Urdu-Page-444

ਸਫਲੁ ਜਨਮੁ ਸਰੀਰੁ ਸਭੁ ਹੋਆ ਜਿਤੁ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਪਰਗਾਸਿਆ ॥
 
safal janam sareer sabh ho-aa jit raam naam pargaasi-aa.
 
When God’s Name became manifest in them, their entire body and human birth became fruitful.
  
ਉਹਨਾਂ ਦਾ ਮਨੁੱਖਾ ਜਨਮ ਕਾਮਯਾਬ ਹੋ ਗਿਆਉਹਨਾਂ ਦਾ ਸਰੀਰ ਭੀ ਸਫਲ ਹੋ ਗਿਆਜਦ ਉਹਨਾਂ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਚਮਕ ਗਿਆ
 
 سپھلُ جنمُ سریِرُ سبھُ ہویا جِتُ رام نامُ پرگاسِیا  
سپھل ۔ کامیاب ۔ رام نام پر گاسیا ۔ الہٰی نام نام نے اپنا نور منور کیا ۔
 
وہ الہٰی نام میں دل لگاتے ہیں۔ غرض یہ کہ زندگی کامیاب ہوجاتی ہے ان کا جسم لینا اور جسم الہٰی نور سے پر نور ہوجاتا ہے غرض یہ کہ ان کے جسم میں نورانی آجاتی ہے ۔ 
 

 ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਭਜੁ ਸਦਾ ਦਿਨੁ ਰਾਤੀ ਗੁਰਮੁਖਿ ਨਿਜ ਘਰਿ ਵਾਸਿਆ ॥੬॥
 
naanak har bhaj sadaa din raatee gurmukh nij ghar vaasi-aa. ||6||
 
O’ Nanak, keep meditating on God’s Name day and night, so that by the Guru’s grace you may also dwell in your own heart (God’s abode). ||6||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਤੂੰ ਭੀ ਸਦਾ ਦਿਨ ਰਾਤ ਹਰ ਵੇਲੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਦਾ ਰਹੁਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਿਆਂ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਥਾਂ ਮਿਲੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ 
 
 نانک ہرِ بھجُ سدا دِنُ راتیِ گُرمُکھِ نِج گھرِ ۄاسِیا  
ہر بھج۔ خدا کو یاد کر ۔ نج گھر ۔ اپنے ذہنی شعور میں۔
 
اے نانک۔ تو بھی روز و شب خدا کو یاد کرتا رہ مرشد کی وساطت سے باگاہ الہٰی میں ٹھکانہ ملتا ہے
 

 ਜਿਨ ਸਰਧਾ ਰਾਮ ਨਾਮਿ ਲਗੀ ਤਿਨ੍ਹ੍ਹ ਦੂਜੈ ਚਿਤੁ ਨ ਲਾਇਆ ਰਾਮ ॥
 
jin sarDhaa raam naam lagee tinH doojai chit na laa-i-aa raam.
 
Those, who develop a firm faith in God’s Name, do not attach their consciousness to someone else.
  
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਨੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਨ ਵਿਚ ਨਿਸ਼ਚਾ ਪੱਕਾ ਕਰ ਲਿਆਉਹ (ਹਰਿਨਾਮ ਦਾ ਪਿਆਰ ਛੱਡ ਕੇਕਿਸੇ ਹੋਰ ਪਦਾਰਥ ਵਿਚ ਆਪਣਾ ਚਿੱਤ ਨਹੀਂ ਜੋੜਦੇ
 
 جِن سردھا رام نامِ لگیِ تِن٘ہ٘ہ دوُجےَ چِتُ ن لائِیا رام  
سردھا ۔ وشواش۔ یقین ۔ عقیدت مندی ۔ رام نام ۔ الہٰی سچ اور حقیقت میں ۔ تن ۔ انہوں نے ۔ دوبے چت نہ لائیا۔ وہ دنیا کی دوسری نعمتوں سے لگاؤ نہیں رکھتے ۔
 
جنہیں الہٰی نام میں پختہ یقین اور عقیدت ہوگئی وہ الہٰی نام کے علاوہ کسی دوسری نعمت سے لگاتےہیں دل اپنا۔ 
 

 ਜੇ ਧਰਤੀ ਸਭ ਕੰਚਨੁ ਕਰਿ ਦੀਜੈ ਬਿਨੁ ਨਾਵੈ ਅਵਰੁ ਨ ਭਾਇਆ ਰਾਮ ॥
 
jay Dhartee sabh kanchan kar deejai bin naavai avar na bhaa-i-aa raam.
 
Even if the entire earth were to be transformed into gold and given to them; except Naam, they love nothing else.
  
ਜੇ ਸਾਰੀ ਧਰਤੀ ਸੋਨਾ ਬਣਾ ਕੇ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਅੱਗੇ ਰੱਖ ਦੇਈਏਤਾਂ ਭੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਤੋਂ ਛੁਟ ਹੋਰ ਕੋਈ ਪਦਾਰਥ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਪਿਆਰਾ ਨਹੀਂ ਲੱਗਦਾ
 
 جے دھرتیِ سبھ کنّچنُ کرِ دیِجےَ بِنُ ناۄےَ اۄرُ ن بھائِیا رام  
کنچن ۔سونا۔ بن ناوے ۔ نام کے بغیر ۔ اور نہ بھائیا۔ تو کسی دوسرے کو پیار نہیں۔
 
گر سادی زمین سونا بنا کر پیش کر دیں تب بھی کسی نعمت کا ہوتا نہیں پیار انہیں۔ ۔ 
 

 ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਮਨਿ ਭਾਇਆ ਪਰਮ ਸੁਖੁ ਪਾਇਆ ਅੰਤਿ ਚਲਦਿਆ ਨਾਲਿ ਸਖਾਈ ॥
 
 raam naam man bhaa-i-aa param sukh paa-i-aa ant chaldi-aa naal sakhaa-ee.
God's Name is pleasing to them, they attain supreme peace by meditating on it and in the end it accompanies them as supporter while departing from the world.
  
ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਪਿਆਰਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ (ਨਾਮ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲਉਹ ਸਭ ਤੋਂ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦੇ ਹਨਅਖ਼ੀਰ ਵੇਲੇ ਦੁਨੀਆ ਤੋਂ ਤੁਰਨ ਲੱਗਿਆਂ ਭੀ ਇਹ ਹਰਿਨਾਮ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਨਾਲ ਸਾਥੀ ਬਣਦਾ ਹੈ
 
 رام نامُ منِ بھائِیا پرم سُکھُ پائِیا انّتِ چلدِیا نالِ سکھائیِ  
پرم ۔ بلند تر۔ انت ۔ بوقت۔ آخرت ۔ سکھائی ۔ ساتھی ۔
 
ان کے دل میں الہٰی نام کا پیار ہے اس سے انہیں روحانی سکون اور سکھ ملتا ہے جو بوقت آخرت ساتھی بنتا ہے ۔ 
 

 ਰਾਮ ਨਾਮ ਧਨੁ ਪੂੰਜੀ ਸੰਚੀ ਨਾ ਡੂਬੈ ਨਾ ਜਾਈ ॥
 
 raam naam Dhan poonjee sanchee naa doobai
  
They gather the wealth of God’s Name, which is neither drowned by water, nor gets lost in any other way.
  
ਉਹ ਸਦਾ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮਧਨ ਨਾਮਸਰਮਾਇਆ ਇਕੱਠਾ ਕਰਦੇ ਹਨਇਹ ਧਨਸਰਮਾਇਆ ਨਾਹ ਪਾਣੀ ਵਿਚ ਡੁੱਬਦਾ ਹੈ ਨਾਹ ਗਵਾਚਦਾ ਹੈ
 
 رام نام دھنُ پوُنّجیِ سنّچیِ نا ڈوُبےَ نا جائیِ  
رام نام ۔ الہٰی نام ۔ دھن۔ دولت ۔ پونجی ۔ سرمایہ ۔ سچی ۔ اکھٹی کی ۔
 
الہٰی نام کا سرمایہ کبھی ختم نہیں ہوتا جو اسے اکھٹا کرتے ہیں نہ پانی میں ڈوبتا ہے نہ ضائع ہوتا ہے ۔ 
 

 ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਇਸੁ ਜੁਗ ਮਹਿ ਤੁਲਹਾ ਜਮਕਾਲੁ ਨੇੜਿ ਨ ਆਵੈ ॥
 
raam naam is jug meh tulhaa jamkaal nayrh na aavai.
To go across the world ocean of vices, God’s Name is like a ship in this world; the fear of death does not come near it.
  
(ਸੰਸਾਰਨਦੀ ਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘਣ ਲਈ)ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਇਸ ਜਗਤ ਵਿਚ (ਮਾਨੋਤੁਲਹਾ ਹੈਮੌਤ ਦਾ ਦੂਤ ਇਸ ਦੇ ਲਾਗੇ ਨਹੀਂ ਲੱਗਦਾ 
 
 رام نامُ اِسُ جگُ مہِ تُلہا جمکالُ نیڑِ ن آۄےَ  
تلہا ۔ عارضی کشیت ۔ جمکال۔ روحانی یا اخلاقی موت ۔
 
الہٰی نام اس سمندر کی مانند دنیا میں ایک کشتی ہے جو اس عالم سے عبور حاصل کراتا ہے ۔ روحانی موت نزدیک نہیں پھٹکتی ۔ 
 

 ਨਾਨਕ ਗੁਰਮੁਖਿ ਰਾਮੁ ਪਛਾਤਾ ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਆਪਿ ਮਿਲਾਵੈ ॥੭॥
 
naanak gurmukh raam pachhaataa kar kirpaa aap milaavai. ||7||
O’ Nanak, one who has realized God by following the Guru’s teachings, showing mercy, He Himself unites that one with Him. ||7||
  
ਹੇ ਨਾਨਕਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨਾਲ ਡੂੰਘੀ ਸਾਂਝ ਪਾ ਲਈਪਰਮਾਤਮਾ ਮੇਹਰ ਕਰ ਕੇ ਆਪ ਉਸ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੋੜ ਲੈਂਦਾ ਹੈ 
 
 نانک گُرمُکھِ رامُ پچھاتا کرِ کِرپا آپِ مِلاۄےَ  
گور مکھ ۔ مرشد کے وساطت سے ۔ پچھاتا ۔ سمجھا ۔
 
اے نانک جس نے مرید مرشد ہوکر خدا کی شراکت حاصل کر لی خدا اسے اپنی کرم وعنایت سے اپنے ساتھ ملا لیتا ہے
 

 ਰਾਮੋ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਸਤੇ ਸਤਿ ਗੁਰਮੁਖਿ ਜਾਣਿਆ ਰਾਮ ॥
 
raamo raam naam satay sat gurmukh jaani-aa raam.
 
God’s Name is eternal and only a Guru’s follower realizes this truth.
  
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਹੈਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਉਸ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨਾਲ ਡੂੰਘੀ ਸਾਂਝ ਪਾਂਦਾ ਹੈ
 
 رامو رام نامُ ستے ستِ گُرمُکھِ جانھِیا رام  
سسے ست۔ سچو سچ ۔
 
الہٰی نام سچ حقیقت اور صدیوی اور دائمی ہے اسے مرید مرشد ہوکر سمجھ آتی ہے 
 

 ਸੇਵਕੋ ਗੁਰ ਸੇਵਾ ਲਾਗਾ ਜਿਨਿ ਮਨੁ ਤਨੁ ਅਰਪਿ ਚੜਾਇਆ ਰਾਮ ॥
 
sayvko gur sayvaa laagaa jin man tan arap charhaa-i-aa raam.
 
Only that disciple commits himself to the Guru’s teachings who surrenders his mind and body to him.
  
ਉਹੀ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਦੱਸੀ ਸੇਵਾ ਵਿਚ ਰੁੱਝਦਾ ਹੈ ਜਿਸ ਨੇ ਆਪਣਾ ਮਨਤਨ ਚੜ੍ਹਾਵੇ ਦੇ ਤੌਰ ਤੇ ਗੁਰੂ ਅੱਗੇ ਰੱਖ ਦਿੱਤਾ ਹੈ
 
 سیۄکو گُر سیۄا لاگا جِنِ منُ تنُ ارپِ چڑائِیا رام  
ارپ ۔ بھینٹ ۔
 
اسے وہی شخص سمجھ سکتا ہے جو اپنا دل وجان مرشد کو بھینٹ کر دیتا ہے 
 

 ਮਨੁ ਤਨੁ ਅਰਪਿਆ ਬਹੁਤੁ ਮਨਿ ਸਰਧਿਆ ਗੁਰ ਸੇਵਕ ਭਾਇ ਮਿਲਾਏ ॥
 
man tan arpi-aa bahut man sarDhi-aa gur sayvak bhaa-ay milaa-ay.
 
Extreme faith wells up in the mind of that disciple who surrenders his mind and body to the Guru; the Guru lovingly unites him with God.
  
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਆਪਣਾ ਮਨ ਆਪਣਾ ਤਨ ਗੁਰੂ ਦੇ ਹਵਾਲੇ ਕਰ ਦਿੱਤਾਉਸ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਗੁਰੂ ਵਾਸਤੇ ਬਹੁਤ ਸਰਧਾ ਪੈਦਾ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈਗੁਰੂ ਉਸ ਨੂੰ ਉਸ ਪ੍ਰੇਮ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਮਿਲਾ ਦੇਂਦਾ ਹੈ l
 
 منُ تنُ ارپِیا بہُتُ منِ سردھِیا گُر سیۄک بھاءِ مِلاۓ  
سردھایا۔ بھاری ۔ عقیدت ۔ سیوک بھائے ۔ خدمت کی عرض اور محبت سے ۔
 
اور مرشد کے بتائےہوئے راستہ پر چلتا ہے جس کے دل میں مرشد کی عقیدہ ت مندی ہے ۔ لہذا اس عقیدت مندی کے اظہار کے عوض مرشد انسان کا خدا ہے ملاپ کراتا ہے ۔ 
 

 ਦੀਨਾ ਨਾਥੁ ਜੀਆ ਕਾ ਦਾਤਾ ਪੂਰੇ ਗੁਰ ਤੇ ਪਾਏ ॥
 
deenaa naath jee-aa kaa daataa pooray gur tay paa-ay.
 
God, the support of the support less and the benefactor of all beings, is realized by following the perfect Guru’s teachings.
  
ਪਰਮਾਤਮਾ ਗਰੀਬਾਂ ਦਾ ਖਸਮ ਹੈ ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਦਾਤਾਂ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਪਾਸੋਂ ਹੀ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 
 دیِنا ناتھُ جیِیا کا داتا پوُرے گُر تے پاۓ  
دینا ناتھ ۔ غریبوں کا مالک ۔ جیئہ کار داتا۔ زندگی عنایت کرنے والا۔ پورے گر۔ کامل مرشد۔
 
غریبوں کا مالک زندگیاں بخشنے والا کا ملمرشد ہی اسکا ملاپ کراتا ہے ۔
 

 ਗੁਰੂ ਸਿਖੁ ਸਿਖੁ ਗੁਰੂ ਹੈ ਏਕੋ ਗੁਰ ਉਪਦੇਸੁ ਚਲਾਏ ॥
 
guroo sikh sikh guroo hai ayko gur updays chalaa-ay.
 
When no difference remains between the Guru and the disciple, then the disciple also propagates the Guru’s teachings.
  
ਜਦ ਗੁਰੂ ਸਿੱਖ ਨਾਲ ਤੇ ਸਿੱਖ ਗੁਰੂ ਨਾਲ ਇਕਰੂਪ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਸਿੱਖ ਭੀ ਗੁਰੂ ਵਾਲੇ ਉਪਦੇਸ਼ (ਦੀ ਲੜੀਨੂੰ ਅਗਾਂਹ ਤੋਰਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 
 گُروُ سِکھُ سِکھُ گُروُ ہےَ ایکو گُر اُپدیسُ چلاۓ  
گرو سکھ سکھ گرو ہے ۔ پہلے سکھ ہوتا ہے بعد میں گرو بنتا ہے مراد دونوں ایک ہیں کیونکہد ونوں کا سبق ایک ہے ۔
 
مرید اور مرشد دونوں کا مقصد اور سبق ایک ہے لہذا وہ ایک ہی ہیں۔ 
 

 ਰਾਮ ਨਾਮ ਮੰਤੁ ਹਿਰਦੈ ਦੇਵੈ ਨਾਨਕ ਮਿਲਣੁ ਸੁਭਾਏ ॥੮॥੨॥੯॥
 
raam naam mant hirdai dayvai naanak milan subhaa-ay. ||8||2||9||
 
O’ Nanak, that person, in whose heart the Guru enshrines God’s Name, intuitively unites with God. ||8||2||9||
  
ਹੇ ਨਾਨਕਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਗੁਰੂ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਮੰਤਰ ਦੇਂਦਾ ਹੈਸੁਭਾਵਕ ਹੀ ਉਸ ਦਾ ਮਿਲਾਪ ਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 
 رام نام منّتُ ہِردےَ دیۄےَ نانک مِلنھُ سُبھاۓ  
ملن سبھائے ملاپ قدرتاً ہوجاتا ہے ۔
 
اے نانک۔ جس انسانکو مرشد اپنا سبق دل میں بسانے کے لئے دیتا ہے ۔ لہذا اس کے پیار اور پریم کے صدقے اسے الہٰی ملاپ حاصل ہوتا ہے ۔
 

 ੴ ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ॥
 
ik-oNkaar satgur parsaad.
 
One eternal God, realized by the grace of the true Guru:
  
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 
  ستِگُر پ٘رسادِ  
ایک لازوال خدا ، سچے گرو کے فضل سے سمجھا گیا

 

 ਆਸਾ ਛੰਤ ਮਹਲਾ ੪ ਘਰੁ ੨ ॥
 
aasaa chhant mehlaa 4 ghar 2.
 
Raag Aasaa, Fourth Guru, Chhant, second beat:
 
 آسا چھنّت مہلا  گھرُ   
 
 ਹਰਿ ਹਰਿ ਕਰਤਾ ਦੂਖ ਬਿਨਾਸਨੁ ਪਤਿਤ ਪਾਵਨੁ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਜੀਉ ॥
 
har har kartaa dookh binaasan patit paavan har naam jee-o.
 
The creator-God is the destroyer of sorrows; His Name is the purifier of sinners.
  
ਜਗਤ ਦਾ ਰਚਨ ਵਾਲਾ ਪ੍ਰਭੂ ਦੁੱਖਾਂ ਦਾ ਨਾਸ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਵਿਕਾਰਾਂ ਵਿਚ ਡਿੱਗੇ ਹੋਏ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਪਵਿਤ੍ਰ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈ
 
 ہرِ ہرِ کرتا دوُکھ بِناسنُ پتِت پاۄنُ ہرِ نامُ جیِءُ  
کرتا ۔ کرتار ۔کرنے والا ۔ ونانس۔ مٹانے والا۔ پتت۔ ناپاک ۔ پاون۔ پوتر۔ پاک۔
 
عالم کو پیدا کرنے والا کرتار سب عذاب مٹانے کی قوت رکھتا ہے اور 
 

 ਹਰਿ ਸੇਵਾ ਭਾਈ ਪਰਮ ਗਤਿ ਪਾਈ ਹਰਿ ਊਤਮੁ ਹਰਿ ਹਰਿ ਕਾਮੁ ਜੀਉ ॥
 
har sayvaa bhaa-ee param gat paa-ee har ootam har har kaam jee-o.
 
The devotional service of God is the most exalted deed; to whom it seems pleasing attains the supreme spiritual status.
  
ਹਰਿਨਾਮ ਸਿਮਰਨਾ ਸਭ ਤੋਂ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਕੰਮ ਹੈਜਿਸ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਸੇਵਾਭਗਤੀ ਪਿਆਰੀ ਲੱਗਦੀ ਹੈ ਉਹ ਸਭ ਤੋਂ ਉੱਚੀ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲੈਂਦਾ ਹੈ 
 
 ہرِ سیۄا بھائیِ پرم گتِ پائیِ ہرِ اوُتمُ ہرِ ہرِ کامُ جیِءُ  
خدمت خدا سے بلند روحانیت واخلاق ہوجاتا ہے یہی انسانی بلند فریضہ ہے ۔ 

 

 ਹਰਿ ਊਤਮੁ ਕਾਮੁ ਜਪੀਐ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਹਰਿ ਜਪੀਐ ਅਸਥਿਰੁ ਹੋਵੈ ॥
 
har ootam kaam japee-ai har naam har japee-ai asthir hovai.
 
Yes Meditation on God’s Name is the most exalted deed and one should always do it; one who does it, becomes stable against vices.
  
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਨਾ ਸਭ ਤੋਂ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਕੰਮ ਹੈਹਰਿਨਾਮ ਸਿਮਰਨਾ ਚਾਹੀਦਾ ਹੈ (ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਹਰਿਨਾਮ ਸਿਮਰਦਾ ਹੈ ਉਹ ਵਿਕਾਰਾਂ ਦੇ ਹੱਲਿਆਂ ਵਲੋਂ ਅਡੋਲਚਿੱਤ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 
 ہرِ اوُتمُ کامُ جپیِئےَ ہرِ نامُ ہرِ جپیِئےَ استھِرُ ہوۄےَ  
اتم ۔ بلند۔ استھر۔ مستقل ۔
 
بلند فریضہ ہے ۔ یاد الہٰی نام کی یادوریصت سےا نسان مستقل مزاج ہوجاتا ہے 
 

 ਜਨਮ ਮਰਣ ਦੋਵੈ ਦੁਖ ਮੇਟੇ ਸਹਜੇ ਹੀ ਸੁਖਿ ਸੋਵੈ ॥
 
 janam maran dovai dukh maytay sehjay hee sukh sovai.
He eradicates the pain of both births and deaths and intuitively lives in peace.
 
ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਜਨਮ ਮਰਣ ਦੋਵੈ ਦੁਖ ਮਿਟਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈਉਹ ਸੁਭਾਵਕ ਹੀ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਵਿਚ ਲੀਨ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 
 جنم مرنھ دوۄےَ دُکھ میٹے سہجے ہیِ سُکھِ سوۄےَ  
سہجے ۔ قدرتی ۔
 
مٹ جاتا ہے تناسخ اسکا سکون روحانی پاتا ہے 
 

 ਹਰਿ ਹਰਿ ਕਿਰਪਾ ਧਾਰਹੁ ਠਾਕੁਰ ਹਰਿ ਜਪੀਐ ਆਤਮ ਰਾਮੁ ਜੀਉ ॥
 
har har kirpaa Dhaarahu thaakur har japee-ai aatam raam jee-o.
 
O’ God, our Master, show mercy on us, so that we may continually meditate on You, the all-pervading God.
  
ਹੇ ਹਰੀਹੇ ਮਾਲਕਕਿਰਪਾ ਕਰ! (ਜੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਕਿਰਪਾ ਕਰੇ ਤਾਂਉਸ ਸਰਬਵਿਆਪਕ ਪਰਮਾਤਮਾ (ਦਾ ਨਾਮਜਪਿਆ ਜਾ ਸਕਦਾ ਹੈ
 
 ہرِ ہرِ کِرپا دھارہُ ٹھاکُر ہرِ جپیِئےَ آتم رامُ جیِءُ  
ٹھاکر۔ آقا۔ مالک ۔ آتم رام جیؤ۔ خدا۔ وہ روح جو ہر جا اور ہر ایک میں بسی ہوئی ہے ۔
 
کرم فرما کر و میرے آقا ید کروں اللہ رام تجھے
 

 ਹਰਿ ਹਰਿ ਕਰਤਾ ਦੂਖ ਬਿਨਾਸਨੁ ਪਤਿਤ ਪਾਵਨੁ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਜੀਉ ॥੧॥
 
har har kartaa dookh binaasan patit paavan har naam jee-o. ||1||
 
The creator-God is the destroyer of sorrows; God’s Name is the Purifier of sinners. ||1||
  
ਜਗਤ ਦਾ ਰਚਨ ਵਾਲਾ ਪਰਮਾਤਮਾ (ਜੀਵਾਂ ਦੇਦੁੱਖਾਂ ਦਾ ਨਾਸ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈਉਸ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਵਿਕਾਰਾਂ ਵਿਚ ਡਿੱਗੇ ਹੋਏ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਪਵਿਤ੍ਰ ਕਰਨ ਜੋਗਾ ਹੈ 
 
 ہرِ ہرِ کرتا دوُکھ بِناسنُ پتِت پاۄنُ ہرِ نامُ جیِءُ  
الہٰی نام بدکاروں گناہگاروں کو پاک بنانے والا ہے ۔ ۔
 

 ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਪਦਾਰਥੁ ਕਲਿਜੁਗਿ ਊਤਮੁ ਹਰਿ ਜਪੀਐ ਸਤਿਗੁਰ ਭਾਇ ਜੀਉ ॥
 
har naam padaarath kalijug ootam har japee-ai satgur bhaa-ay jee-o.
 
The wealth of God’s Name is the most exalted in Kalyug; we should meditate on God’s Name while we are imbued with the love of the true Guru.
 
ਕਲਜੁਗ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਪਦਾਰਥ ਹੈਪਰ ਇਹ ਹਰਿਨਾਮ ਗੁਰੂ ਦੇ ਪ੍ਰੇਮ ਵਿਚ ਟਿਕ ਕੇ ਹੀ ਜਪਿਆ ਜਾ ਸਕਦਾ ਹੈ
 
 ہرِ نامُ پدارتھُ کلِجُگِ اوُتمُ ہرِ جپیِئےَ ستِگُر بھاءِ جیِءُ  
پدارتھ ۔ نعمت۔ کلجگ ۔ کال۔ موت۔ اخلاق یار وحانی موت ۔ جگ ۔ زمانہ ۔ اس اخلاقی موت کے زمانے میں۔ ستگر بھائے ۔ جیسے سچا مرشد چاہتا ہے ۔
 
اس مالیات کی گرفت میں مکوت زمانے میں الہٰی نام یعنی سچ اور حقیقت پرستی بھاری نعمت ہے مگر اس نام پر عمل اور یاد سچے مرشد کے پیار سے ہی ہوسکتا ہے ۔ 
 

 ਗੁਰਮੁਖਿ ਹਰਿ ਪੜੀਐ ਗੁਰਮੁਖਿ ਹਰਿ ਸੁਣੀਐ ਹਰਿ ਜਪਤ ਸੁਣਤ ਦੁਖੁ ਜਾਇ ਜੀਉ ॥
 
gurmukh har parhee-ai gurmukh har sunee-ai har japat sunat dukh jaa-ay jee-o.
We should read the words of God’s praises and listen to these by following the Guru’s teachings; sorrows depart by meditating and listening to God’s Name.
  
ਗੁਰੁ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਹੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਵਾਲੀ ਬਾਣੀ ਪੜ੍ਹੀ ਜਾ ਸਕਦੀ ਹੈ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਹੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਸੁਣੀ ਜਾ ਸਕਦੀ ਹੈ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਜਪਦਿਆਂ ਸੁਣਦਿਆਂ (ਹਰੇਕਦੁੱਖ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 
 گُرمُکھِ ہرِ پڑیِئےَ گُرمُکھِ ہرِ سُنھیِئےَ ہرِ جپت سُنھت دُکھُ جاءِ جیِءُ  
گورمکھ ہر پڑھیئے ۔ مرشد کی وساطت سے خدا کو سمجھو ۔ اور سنو۔
 
مرشد کی مصرفت اسے سمجھو سنو اس کی یادوریاض سے عذاب مٹ جاتے ہیں اور بھاری سکون روحانی اور راحت محسوس ہوتی ہے ۔
 

 ਹਰਿ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਜਪਿਆ ਦੁਖੁ ਬਿਨਸਿਆ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਪਰਮ ਸੁਖੁ ਪਾਇਆ ॥
 
har har naam japi-aa dukh binsi-aa har naam param sukh paa-i-aa.
 
The person who meditated on God’s Name, his misery vanished and he enjoyed the supreme bliss by meditating on God’s Name .
  
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਜਪਿਆ ਉਸ ਦਾ ਦੁੱਖ ਨਾਸ ਹੋ ਗਿਆਜਿਸ ਨੇ ਹਰਿਨਾਮ ਜਪਿਆ ਉਸ ਨੇ ਸਭ ਤੋਂ ਉੱਚਾ ਆਨੰਦ ਮਾਣਿਆ
 
 ہرِ ہرِ نامُ جپِیا دُکھُ بِنسِیا ہرِ نامُ پرم سُکھُ پائِیا  
ونسیا۔ مٹیا ۔ پرم سکھ ۔ بھاری بلند راحت۔
 
سچے مرشد کے سبق سے دل علم و دانمشندی سے پر نور ہوجاتا ہے ۔ 
 

 ਸਤਿਗੁਰ ਗਿਆਨੁ ਬਲਿਆ ਘਟਿ ਚਾਨਣੁ ਅਗਿਆਨੁ ਅੰਧੇਰੁ ਗਵਾਇਆ ॥
 
satgur gi-aan bali-aa ghat chaanan agi-aan anDhayr gavaa-i-aa.
 
The person, whose mind got illuminated with the divine knowledge given by the true Guru, dispelled the darkness of ignorance from within.
  
ਗੁਰੂ ਦੀ ਦਿੱਤੀ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੀ ਸੂਝ ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਅੰਦਰ ਚਮਕ ਪਈ ਉਸ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ (ਸਹੀ ਜੀਵਨ ਦਾਚਾਨਣ ਹੋ ਪਿਆਉਸ ਨੇ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰੋਂ ਅਗਿਆਨਤਾ ਦਾ ਹਨੇਰਾ ਦੂਰ ਕਰ ਲਿਆ
 
 ستِگُر گِیانُ بلِیا گھٹِ چاننھُ اگِیانُ انّدھیرُ گۄائِیا  
گیان۔ سمجھ ۔ دانشمندی ۔ گھٹ چانن۔ دل سمجھ اور دانشمندی سے روشن ۔ روشناس ہوا۔ اگیان ۔ نا سمجھی ۔ نادانی ۔ اندھیرا۔ جہالت۔
 
جہات کا اندھیرا مٹ جاتا ہے دانشمندی کا سورج طلوع ہوجاتا ہے ۔ 
 

 ਹਰਿ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਤਿਨੀ ਆਰਾਧਿਆ ਜਿਨ ਮਸਤਕਿ ਧੁਰਿ ਲਿਖਿ ਪਾਇ ਜੀਉ ॥
 
har har naam tinee aaraaDhi-aa jin mastak Dhur likh paa-ay jee-o.
 
They alone meditate on God’s Name in whose destiny it was so preordained from the beginning.
  
ਉਹਨਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਨੇ ਹੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਿਆ ਹੈ ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਦੇ ਮੱਥੇ ਉਤੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨੇ ਧੁਰੋਂ ਸਿਮਰਨ ਦਾ ਲੇਖ ਲਿਖ ਕੇ ਰੱਖ ਦਿੱਤਾ ਹੈ
 
 ہرِ ہرِ نامُ تِنیِ آرادھِیا جِن مستکِ دھُرِ لِکھِ پاءِ جیِءُ  
تنی ۔ انہوں نے ۔ ارادھیا۔ دل میں بسائیا۔ مستک ۔ پیشانی ۔ دھر ۔ الہٰی بارگاہ سے ۔
 
مگر خدا کو یاد وریاض وہی کرتے ہیں جن کی پیشانی پر الہٰی بارگاہ کی طرف سے تحریردکندہ ہوتے ہیں۔ 
 

 ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਪਦਾਰਥੁ ਕਲਿਜੁਗਿ ਊਤਮੁ ਹਰਿ ਜਪੀਐ ਸਤਿਗੁਰ ਭਾਇ ਜੀਉ ॥੨॥
 
har naam padaarath kalijug ootam har japee-ai satgur bhaa-ay jee-o. ||2||
 
The wealth of God’s Name is the most exalted in Kalyug; we should meditate on God’s Name while we are imbued with the love of the true Guru. ||2||
  
ਕਲਜੁਗ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਪਦਾਰਥ ਹੈਪਰ ਇਹ ਹਰਿਨਾਮ ਗੁਰੂ ਦੇ ਪ੍ਰੇਮ ਵਿਚ ਟਿਕ ਕੇ ਹੀ ਜਪਿਆ ਜਾ ਸਕਦਾ ਹੈ
 
 ہرِ نامُ پدارتھُ کلِجُگِ اوُتمُ ہرِ جپیِئےَ ستِگُر بھاءِ جیِءُ  
یہ دنیاوی سمایہ کی گفت آئے جہاں میں الہٰی نام ایک نعمت ہے مگر یہ الہٰی نام مرشد کی محبت میں یاد ہو سکتا ہے
 

 ਹਰਿ ਹਰਿ ਮਨਿ ਭਾਇਆ ਪਰਮ ਸੁਖ ਪਾਇਆ ਹਰਿ ਲਾਹਾ ਪਦੁ ਨਿਰਬਾਣੁ ਜੀਉ ॥
 
 har har man bhaa-i-aa param sukh paa-i-aa har laahaa pad nirbaan jee-o.
He, to whose mind it is pleasing to recite God’s Name, attains the celestial peace; by meditating on God’s Name, attains the supreme spiritual status.
 
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ (ਦਾ ਨਾਮਮਨ ਵਿਚ ਪਿਆਰਾ ਲੱਗਾ ਉਸ ਨੇ ਸਭ ਤੋਂ ਉੱਚਾ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰ ਲਿਆਉਸ ਨੇ ਉਹ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਖੱਟ ਲਈ ਜਿਥੇ ਕੋਈ ਵਾਸਨਾ ਪੋਹ ਨਹੀਂ ਸਕਦੀ
 
 ہرِ ہرِ منِ بھائِیا پرم سُکھ پائِیا ہرِ لاہا پدُ نِربانھُ جیِءُ  
من بھا ئیا۔ دل کو اچھا لگا۔ لاہا ۔ منافع۔ پد نر بان۔ ذہن کی وہ حالت جہاں خواہشات بے اثر ہوجاتے ہیں۔
 
جس شخص کے دل میں ہے محبت خدا سے بلند روحانی سکون وہ پا لیتا ہے اس کی ذہنی حالت ایسی ہو جاتی ہے جہاں خواہشات بے اثر ہوجاتی ہیں اور ایسا منافع کماتا ہے ۔ 
 

 ਹਰਿ ਪ੍ਰੀਤਿ ਲਗਾਈ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਸਖਾਈ ਭ੍ਰਮੁ ਚੂਕਾ ਆਵਣੁ ਜਾਣੁ ਜੀਉ ॥
 
har pareet lagaa-ee har naam sakhaa-ee bharam chookaa aavan jaan jee-o.
 
God's Name becomes the companion of a person, who embraces love for Him; his wandering in doubts and his cycles of birth and death come to an end.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਨਾਲ ਪ੍ਰੇਮ ਪਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦਾ ਨਾਮ ਉਸ ਦਾ ਸਹਾਇਕ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈਉਸ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਅਤੇ ਜਨਮ ਮਰਨ ਦਾ ਗੇੜ ਮੁੱਕ ਮੁੱਕ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 
 ہرِ پ٘ریِتِ لگائیِ ہرِ نامُ سکھائیِ بھ٘رمُ چوُکا آۄنھُ جانھُ جیِءُ  
ہر پریت ا لہٰی محبت ۔ سکھائی۔ ساتھی ۔ بھرم ۔ وہم وگمان ۔
 
جسے پیار ا الہٰی ہوجاتا ہے الہٰی نام اسکا صدیوی ساتھی وہجاتا ہے تناسخ کا وہم وگامن مٹ جاتا ہے