Urdu-Page-443

ਗੁਰਮੁਖੇ ਗੁਰਮੁਖਿ ਨਦਰੀ ਰਾਮੁ ਪਿਆਰਾ ਰਾਮ ॥
 
gurmukhay gurmukh nadree raam pi-aaraa raam.
It is through the Guru’s teachings that a Guru’s follower is able to realize God.
 
ਗੁਰੂ ਦੇ ਸਨਮੁਖ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇ ਉਸ (ਵਡਭਾਗੀਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਗੁਰਾਂ ਦੇ ਰਾਹੀਂ ਪਿਆਰਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਿੱਸ ਪੈਂਦਾ ਹੈ
 
 گُرمُکھے گُرمُکھِ ندریِ رامُ پِیارا رام  
گورمکھے گورمکھ ۔ مرید مرشد ۔مرشد کے وسیلے سے ۔ ندر۔ نظر۔
 
مریداان مرشد کو خداوند کریم کو دیدار خدا ہونے لگتا ہے ۔ 
 

 ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਪਿਆਰਾ ਜਗਤ ਨਿਸਤਾਰਾ ਰਾਮ ਨਾਮਿ ਵਡਿਆਈ ॥
 
raam naam pi-aaraa jagat nistaaraa raam naam vadi-aa-ee.
 
God’s Name, the emancipator of the world, becomes dear to him; the Name of God is his glory.
 
ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘਾਣ ਵਾਲਾ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਪਿਆਰਾ ਲੱਗਣ ਲੱਗ ਪੈਂਦਾ ਹੈਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਨਾਲ ਉਸ ਨੂੰ ਆਦਰਮਾਣ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 
 رام نامُ پِیارا جگت نِستارا رام نامِ ۄڈِیائیِ  
نستار۔ کامیابی عنایت کرنے والا۔ رام نام وڈیائی ۔ الہٰی نام سے عظمت و شہرت حاصل ہوتی ہے
 
الہٰی نام جس سے جہان میں کامیابی حاصل ہوتی ہےا ورعظمت و شہرت حاصل ہوتی ہے ۔ 
 

 ਕਲਿਜੁਗਿ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਬੋਹਿਥਾ ਗੁਰਮੁਖਿ ਪਾਰਿ ਲਘਾਈ ॥
 
kalijug raam naam bohithaa gurmukh paar laghaa-ee.
 In Kalyug, God’s Name is like a ship; through the Guru’s teachings it carries a person across the worldly ocean of vices.
 
ਕਲਿਜੁਗ ਅੰਦਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਜਹਾਜ਼ ਦਾ ਕੰਮ ਦੇਂਦਾ ਹੈ ਹੈਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪਾ ਕੇ ਪ੍ਰਭੂ ਜੀਵ ਨੂੰ ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ
 
 کلِجُگِ رام نامُ بوہِتھا گُرمُکھِ پارِ لگھائیِ  
کلجگ ۔ یہاں کلجگ سے رماد انسانی زندگی کی وہ حالت جو بد اخلاقیوں اور اعمالات بد میں بذرتی ہے ۔ بوہتھا ۔ جہاز۔ گور مکھ ۔ مرشد کے ذریعے ۔ پار ۔ کامیابی ۔
 
اس گناہوں اور بدکاریوں بھرتے دور زماں میں الہٰی نام یعنی سچ اور حقیقت ہی ایک جہاز ہے اور مرشد ایک ملاح وکر اس دنیاوی بدیوں کے سمند رسے کامیاب بناتا ہے اور اس کو عبور کراتا ہے ۔ 
 

 ਹਲਤਿ ਪਲਤਿ ਰਾਮ ਨਾਮਿ ਸੁਹੇਲੇ ਗੁਰਮੁਖਿ ਕਰਣੀ ਸਾਰੀ ॥
 
halat palat raam naam suhaylay gurmukh karnee saaree. 
Those who attune to God‘s Name, attain peace both here and hereafter; meditation on Naam through the Guru’s teachings is the most sublime deed.
 
ਜੇਹੜੇ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਵਿਚ ਜੁੜਦੇ ਹਨ ਉਹ ਇਸ ਲੋਕ ਤੇ ਪਰਲੋਕ ਵਿਚ ਸੁਖੀ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਨਾਮ ਸਿਮਰਨਾ ਹੀ ਸਭ ਤੋਂ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਕਰਨਜੋਗ ਕੰਮ ਹੈ
 
 ہلتِ پلتِ رام نامِ سُہیلے گُرمُکھِ کرنھیِ ساریِ  
ہلت پلت۔ دونوں عالموں میں۔ سہیلے ۔ آسان۔ کرنی ۔ کار ۔ اعمال۔ ساری ۔ بنیاد ۔ مول ۔
 
اس سے ہر دو عالموں میں الہٰی نام سے زندگی گذارنا آسان ہوجاتا ہے اور مرشد کے وسیلے سے اعمال اعلے اور انسان نیک سیرت ہوجاتا ہے 
 

 ਨਾਨਕ ਦਾਤਿ ਦਇਆ ਕਰਿ ਦੇਵੈ ਰਾਮ ਨਾਮਿ ਨਿਸਤਾਰੀ ॥੧॥
 
naanak daat da-i-aa kar dayvai raam naam nistaaree. ||1||
O’ Nanak, showing His mercy, upon whom God bestows this gift, He ferries him across the world ocean of vices by attuning him to Naam . ||1||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਮੇਹਰ ਕਰ ਕੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਨਾਮ ਦੀ ਦਾਤ ਦੇਂਦਾ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ ਨਾਮ ਵਿਚ ਜੋੜ ਕੇ ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ  
 
 نانک داتِ دئِیا کرِ دیۄےَ رام نامِ نِستاریِ  
دات۔ نعمت۔ دیا ۔ مہربانی
 
اے نانک ۔ اس انسان کو اپنی کرم و عنایت سے خدا الہٰی نام سے اس کی زندگی کامیاب بنا دیتا ہے
 

 ਰਾਮੋ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਜਪਿਆ ਦੁਖ ਕਿਲਵਿਖ ਨਾਸ ਗਵਾਇਆ ਰਾਮ ॥
 
 raamo raam naam japi-aa dukh kilvikh naas gavaa-i-aa raam.
Those who have meditated on God’s Name have eradicated all their sins and sufferings.
 
(ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਨੇਹਰ ਵੇਲੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਿਆਉਹਨਾਂ ਨੇ ਆਪਣੇ ਸਾਰੇ ਦੁੱਖ ਤੇ ਪਾਪ ਨਾਸ ਕਰ ਲਏ
 
 رامو رام نامُ جپِیا دُکھ کِلۄِکھ ناس گۄائِیا رام  
رام نام جپیا ۔ الہٰی نام کی ریاض سے ۔ دکھ ۔ عذاب ۔ کل وکھ ۔ گناہ ۔ دوش۔ ناس ۔فناہ ۔ مٹ جاتے ہیں۔
 
اے انسان الہٰی نام یعنی سچ اور حقیقت کی ریاض سے تمام عذاب اور گناہ عافو ہو جاتے ہیں۔ 
 

 ਗੁਰ ਪਰਚੈ ਗੁਰ ਪਰਚੈ ਧਿਆਇਆ ਮੈ ਹਿਰਦੈ ਰਾਮੁ ਰਵਾਇਆ ਰਾਮ ॥
 
 gur parchai gur parchai Dhi-aa-i-aa mai hirdai raam ravaa-i-aa raam.
Upon meeting and following the Guru’s teachings, I remembered God and enshrined Him in my heart.
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਹਰ ਵੇਲੇ ਆਹਰੇ ਲੱਗ ਕੇ ਮੈਂ ਹਰਿਨਾਮ ਸਿਮਰਨਾ ਸ਼ੁਰੂ ਕੀਤਾਮੈਂ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨੂੰ ਵਸਾ ਲਿਆ
 
 گُر پرچےَ گُر پرچےَ دھِیائِیا مےَ ہِردےَ رامُ رۄائِیا رام  
گر پرچے ۔ مرشد کی وساطت سے ۔ دھیائیا ۔ دھیان دیا ۔ ہر وے ۔ دلمیں۔ رام ۔ خدا۔ روائیا بسائیا۔
 
مرشد کے وسیلے سے خدا کو دل میں بسائیا ۔ 
 

 ਰਵਿਆ ਰਾਮੁ ਹਿਰਦੈ ਪਰਮ ਗਤਿ ਪਾਈ ਜਾ ਗੁਰ ਸਰਣਾਈ ਆਏ ॥
 
ravi-aa raam hirdai param gat paa-ee jaa gur sarnaa-ee aa-ay.
 
I attained the supreme spiritual status, when I sought the Guru’s refuge and enshrined God in my heart,
 
ਜਦੋਂ ਮੈਂ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ  ਪਿਆਤੇ,ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਵਸਾਇਆਤਾਂ ਮੈਂ ਸਭ ਤੋਂ ਉੱਚੀ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰ ਲਈ
 
 رۄِیا رامُ ہِردےَ پرم گتِ پائیِ جا گُر سرنھائیِ آۓ  
پرم گت۔ زندگی کی بلند روحانی حالت ۔ گر سنائی ۔ پناہ مرشد سے ۔
 
خدا کےد ل میں بس جانے سےا خلاقی و روحانی زندگی کی بلندی حاصل ہوئی سایہ مرشد میں آنے کی بدولت 
 

 ਲੋਭ ਵਿਕਾਰ ਨਾਵ ਡੁਬਦੀ ਨਿਕਲੀ ਜਾ ਸਤਿਗੁਰਿ ਨਾਮੁ ਦਿੜਾਏ ॥
 
lobh vikaar naav dubdee niklee jaa satgur naam dirhaa-ay.
 
When the true Guru made me firmly believe in Naam, my life which was sinking like a boat laden with the load of greed and sins, was saved.
 
ਜਦ ਸੱਚੇ ਗੁਰਾਂ ਨੇ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਪੱਕਾ ਕਰ ਦਿੱਤਾਤਾਂ ਲਾਲਚ ਅਤੇ ਪਾਪ ਨਾਲ ਲੱਦੀ ਹੋਈ ਮੇਰੀ ਡੁਬਦੀ ਬੇੜੀ ਬਚ ਨਿਕਲੀ
 
 لوبھ ۄِکار ناۄ ڈُبدیِ نِکلیِ جا ستِگُرِ نامُ دِڑاۓ  
لوبھ ۔ لالچ ۔ وکار ۔ بدکار۔ برائی ۔ ناؤ ۔ کشتی ۔ زندگی کی کشتی ۔ دڑائے ۔ پختہ ۔
 
لالچ اور برایوں میں ملوث روحانی زندگی کی ڈوبتی کشتی جب سچے مرشد کے وسیلے سے نام پختہ طور پر بسالیا زندگی کے بھنور سے باہر نکل آئی 
 

 ਜੀਅ ਦਾਨੁ ਗੁਰਿ ਪੂਰੈ ਦੀਆ ਰਾਮ ਨਾਮਿ ਚਿਤੁ ਲਾਏ ॥
 
jee-a daan gur poorai dee-aa raam naam chit laa-ay.
 The Perfect Guru blessed me with the gift of righteous life and I attuned my mind to God’s Name.
 
 ਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਨੇ ਸੱਚੀ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦੀ ਦਾਤ ਦਿੱਤੀਜਦ ਅਸਾਂ ਰਾਮਨਾਮ ਵਿੱਚ ਦਿਲ ਲਾਇਆ
 
 جیِء دانُ گُرِ پوُرےَ دیِیا رام نامِ چِتُ لاۓ  
جیئہ دان۔ زندگی کی خیرات اخلاق و روحانی زندگی
 
کامل مرشد نے اخلاقی زندگی کی دات عنایت فرمائی ۔ اس نے الہٰی نام اپنے دل ودماغ میں ذہن نیشن کرلیا۔ 
 

 ਆਪਿ ਕ੍ਰਿਪਾਲੁ ਕ੍ਰਿਪਾ ਕਰਿ ਦੇਵੈ ਨਾਨਕ ਗੁਰ ਸਰਣਾਏ ॥੨॥
 
aap kirpaal kirpaa kar dayvai naanak gur sarnaa-ay. ||2||
 
O’ Nanak, when a person comes to the Guru’s refuge, the merciful God Himself shows kindness and blesses him with the gift of Naam. ||2||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪਾ ਕੇ ਦਰਿਆ ਦਾ ਘਰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਆਪ ਹੀ ਕਿਰਪਾ ਕਰ ਕੇ ਨਾਮ ਦੀ ਦਾਤ ਦੇਂਦਾ ਹੈ 
 
 آپِ ک٘رِپالُ ک٘رِپا کرِ دیۄےَ نانک گُر سرنھاۓ  
اے نانک سایہ مرشد اپنانے سے خدا خود کرم و عنایت فرماتا ہے
 

 ਬਾਣੀ ਰਾਮ ਨਾਮ ਸੁਣੀ ਸਿਧਿ ਕਾਰਜ ਸਭਿ ਸੁਹਾਏ ਰਾਮ ॥
 
banee raam naam sunee siDh kaaraj sabh suhaa-ay raam.
 
One who listened to the Guru’s word of God’s praises, all his tasks got beautifully accomplished and he achieved the purpose of human life.
 
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਬਾਣੀ ਦੁਆਰਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਸੁਣੀਉਸ ਨੂੰ (ਮਨੁੱਖਾ ਜਨਮਮਨੋਰਥ ਵਿਚਕਾਮਯਾਬੀ ਹਾਸਲ ਹੋ ਗਈਉਸ ਦੇ ਸਾਰੇ ਕੰਮ ਸਫਲ ਹੋ ਗਏ
 
 بانھیِ رام نام سُنھیِ سِدھِ کارج سبھِ سُہاۓ رام  
بانی رام نام۔ الہٰی کلام۔ گر سبد۔ سدھ ۔ درست۔ سہائے ۔ سہاونے ۔ کارج ۔ کام ۔
 
جس نے بھی الہٰی کلام سنے کامیابی پائی ۔ اس کے تمام کام درست ہوئے ۔ 
 

 ਰੋਮੇ ਰੋਮਿ ਰੋਮਿ ਰੋਮੇ ਮੈ ਗੁਰਮੁਖਿ ਰਾਮੁ ਧਿਆਏ ਰਾਮ ॥
 
 romay rom rom romay mai gurmukh raam Dhi-aa-ay raam.
 Through the Guru’s teachings I am meditating on God’s Name with each and every pore of my body.
 
ਮੈਂ ਭੀ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਰੋਮ ਰੋਮ ਰਾਹੀਂ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰ ਰਿਹਾ ਹਾਂ
 
 رومے رومِ رومِ رومے مےَ گُرمُکھِ رامُ دھِیاۓ رام  
رومے روم روم رومے ۔ با بال ۔ گورمکھ ۔ مرشد کے ذریعے ۔
 
میں مرشد کے وسیلے سے میرے بال با ل نے خدا کو یاد کیا۔ 
 

 ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਧਿਆਏ ਪਵਿਤੁ ਹੋਇ ਆਏ ਤਿਸੁ ਰੂਪੁ ਨ ਰੇਖਿਆ ਕਾਈ ॥
 
raam naam Dhi-aa-ay pavit ho-ay aa-ay tis roop na raykh-i-aa kaa-ee.
 
My life has been rendered immaculate by meditating on the Name of that God who does not have any form or feature.
 
ਜਿਸ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਕੋਈ ਖਾਸ ਚਿਹਨਚਕ੍ਰ ਨਹੀਂ ਬਿਆਨ ਕੀਤਾ ਜਾ ਸਕਦਾ ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰ ਕੇ ਮੈਂ ਪਵਿਤ੍ਰ ਜੀਵਨ ਵਾਲਾ ਹੋ ਗਿਆ ਹਾਂ
 
 رام نامُ دھِیاۓ پۄِتُ ہوءِ آۓ تِسُ روُپُ ن ریکھِیا کائیِ  
پوت۔ پاک ۔ تس روپ نہ ریکھیا۔ جس کی کوئی شکل و صورت نہیں۔
 
ریاض کی الہٰی نام کی ریاض سے زندگی پاکیزہ ہوئی اور الہٰی در نصیب ہوا جو شکل وصورت سے مبرا ہے
 

 ਰਾਮੋ ਰਾਮੁ ਰਵਿਆ ਘਟ ਅੰਤਰਿ ਸਭ ਤ੍ਰਿਸਨਾ ਭੂਖ ਗਵਾਈ ॥
 
raamo raam ravi-aa ghat antar sabh tarisnaa bhookh gavaa-ee.
 
All my worldly yearnings have vanished and now God alone dwells in my heart.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਮੇਰੇ ਦਿਲ ਅੰਦਰ ਰਮਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ ਅਤੇ ਮੇਰੀ ਖਾਹਿਸ਼ ਤੇ ਭੁੱਖ ਸਮੁਹ ਦੂਰ ਹੋ ਗਈਆਂ ਹਨ, 
 
 رامو رامُ رۄِیا گھٹ انّترِ سبھ ت٘رِسنا بھوُکھ گۄائیِ  
گھٹ انتر۔ دلمیں۔ ردیا ۔ بس گیا ۔ تشنا۔ خواہشات ۔ لالچ ۔ بھوکھ ۔ ستیل ۔ ٹھنڈا۔ خنک ۔
 
جس نے ہر وقت الہٰی یاد دلمیں سمائی ۔ اس کے دل سے دنیاوی دولت کا لالچ اور بھوک مٹ گئی ۔ دل وجان ٹھنڈا پر سکون محسوس کیا۔
 

 ਮਨੁ ਤਨੁ ਸੀਤਲੁ ਸੀਗਾਰੁ ਸਭੁ ਹੋਆ ਗੁਰਮਤਿ ਰਾਮੁ ਪ੍ਰਗਾਸਾ 
 
man tan seetal seegaar sabh ho-aa gurmat raam pargaasaa.
 
God is revealed to me through the Guru's teachings, my mind and body are totally adorned with peace and tranquility.
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਿੱਖਿਆ ਨਾਲ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਰੌਸ਼ਨ ਹੋ ਗਿਆ ਹੈ, ਮੇਰੀ ਆਤਮਾ ਤੇ ਦੇਹਿ ਠੰਢ ਚੈਨ ਦੇ ਸਮੂਹ ਨਾਲ ਸਸ਼ੋਭਤ ਹੋ ਗਏ ਹਨ, 
 
 منُ تنُ سیِتلُ سیِگارُ سبھُ ہویا گُرمتِ رامُ پ٘رگاسا  
گرمت ۔ سبق مرشد۔ رام پرگاسا۔ خدا نے اپنا نور دکھائیا ۔
 
غرض یہ کہ اس کی روحانی زندگی پر کشش ہوگئی ۔ سبق مرشد سے اس کے دل میں ا لہٰی نام روشن ہوا۔ 
 

 ਨਾਨਕ ਆਪਿ ਅਨੁਗ੍ਰਹੁ ਕੀਆ ਹਮ ਦਾਸਨਿ ਦਾਸਨਿ ਦਾਸਾ ॥੩॥
 
naanak aap anoograhu kee-aa ham daasan daasan daasaa. ||3||
 
O’ Nanak, God Himself has bestowed mercy on me and I have become the most humble servant of His devotees. ||3||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਪਰਮਾਤਮਾ ਨੇ ਆਪ ਮੇਰੇ ਉੱਤੇ ਮੇਹਰ ਕੀਤੀ ਹੈ ਅਤੇ ਮੈਂ ਉਸ ਦੇ ਦਾਸਾਂ ਦੇ ਦਾਸਾਂ ਦਾ ਦਾਸ ਬਣ ਗਿਆ ਹਾਂ 
 
 نانک آپِ انُگ٘رہُ کیِیا ہم داسنِ داسنِ داسا  
انگریہہ۔ کرم وعنایت فرمائی ۔
 
اے نانک۔ جب سے خدا مہربان ہوا ہے میں خادم خادمان ہوگیا ہوں 
 

 ਜਿਨੀ ਰਾਮੋ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਵਿਸਾਰਿਆ ਸੇ ਮਨਮੁਖ ਮੂੜ ਅਭਾਗੀ ਰਾਮ ॥
 
jinee raamo raam naam visaari-aa say manmukh moorh abhaagee raam.
 
Those who have forsaken God’s Name, are self-willed, foolish and unfortunate.
 
ਆਪਣੇ ਮਨ ਦੇ ਪਿੱਛੇ ਤੁਰਨ ਵਾਲੇ ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਬੰਦਿਆਂ ਨੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਭੁਲਾ ਦਿੱਤਾਉਹ ਮੂਰਖ ਬਦਕਿਸਮਤ ਹੀ ਰਹੇ
 
 جِنیِ رامو رام نامُ ۄِسارِیا سے منمُکھ موُڑ ابھاگیِ رام  
منمکھ ۔ مرید من۔ خودی پسند۔ مور۔ مورکھ ۔ نادان ۔ ابھاگی ۔ بد قسمت۔
 
جن بد قسمت مریدان من نے الہٰی نام یعنی سچ اور حقیق کو بھلا دیا
 

 ਤਿਨ ਅੰਤਰੇ ਮੋਹੁ ਵਿਆਪੈ ਖਿਨੁ ਖਿਨੁ ਮਾਇਆ ਲਾਗੀ ਰਾਮ ॥
 
tin antray moh vi-aapai khin khin maa-i-aa laagee raam.
 
Within them prevails the worldly attachments and at every moment Maya (worldly riches) keeps afflicting them.
 
ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਅੰਦਰ ਮੋਹ ਜੋਰ ਪਾਈ ਰੱਖਦਾ ਹੈਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਹਰ ਵੇਲੇ ਮਾਇਆ ਚੰਬੜੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ
 
 تِن انّترے موہُ ۄِیاپےَ کھِنُ کھِنُ مائِیا لاگیِ رام  
انترے ۔ دل میں۔ موہ ۔ محبت۔ دیاپے ۔ بستی ہے ۔
 
ان کے دل میں دنیاوی دولت کی محبت اپنا زور بر قرار رکھتی ہے ۔ ان کو دنیاوی مائیا کی غلاظت اور ناپاکی اپنی لپٹی میں رکھتی ہے 
 

 ਮਾਇਆ ਮਲੁ ਲਾਗੀ ਮੂੜ ਭਏ ਅਭਾਗੀ ਜਿਨ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਨਹ ਭਾਇਆ ॥
 
maa-i-aa mal laagee moorh bha-ay abhaagee jin raam naam nah bhaa-i-aa.
 
Those whom God’s Name is not pleasing, their minds are soiled by Maya (worldly riches) and such fools always remain unfortunate.
 
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਪਿਆਰਾ ਨਹੀਂ ਲੱਗਦਾਉਹ ਮੂਰਖ ਬਦਕਿਸਮਤ ਹੀ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਦੀ ਮੈਲ ਲੱਗੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ
 
 مائِیا ملُ لاگیِ موُڑ بھۓ ابھاگیِ جِن رام نامُ نہ بھائِیا  
مل ۔ میل۔ غلاظت۔ آلودگی ۔ لاگی ۔ ملوث ۔ ابھاگی ۔ بد قسمت۔ نیہ بھائیا۔ پیار ا نہ لگا۔
 
۔ جنہیں الہٰی نام سچ اور حقیقت نہیں بھاتی ۔ جو انسان کے دل سے الہٰی نام چرا لیتی ہیں۔
 

 ਅਨੇਕ ਕਰਮ ਕਰਹਿ ਅਭਿਮਾਨੀ ਹਰਿ ਰਾਮੋ ਨਾਮੁ ਚੋਰਾਇਆ ॥
 
anayk karam karahi abhimaanee har raamo naam choraa-i-aa.
 
These arrogant persons do many kinds of ritualistic deeds, but hesitate from meditating on God’s Name.
 
ਓਹ ਹੰਕਾਰੀ ਲੋਕ ਹੋਰ ਤਾਂ ਕਈ ਕਰਮ ਕਰਦੇ ਹਨਪਰ ਹਰੀਨਾਮ ਨੂੰ ਲੁਕਾ ਰੱਖਦੇ ਹਨਭਾਵ ਮੂੰਹੋਂ ਨਹੀਂ ਕੱਢਦੇ
 
 انیک کرم کرہِ ابھِمانیِ ہرِ رامو نامُ چورائِیا  
انیک ۔ بیشمار ۔ کرم ۔ اعملا۔ ابھیمانی ۔ مغرور۔
 
الہٰی نام بھلا کر بیشمار اعمال اور رسومات کرتے ہیں جس سے مغرور ہوجاتے ہیں
 

 ਮਹਾ ਬਿਖਮੁ ਜਮ ਪੰਥੁ ਦੁਹੇਲਾ ਕਾਲੂਖਤ ਮੋਹ ਅੰਧਿਆਰਾ ॥
 
mahaa bikham jam panth duhaylaa kaalookhat moh anDhi-aaraa.
 
Because of the darkness of ignorance, their spiritual path in life is very arduous and painful as if they are walking on the demon’s path.
 
 ਮੋਹ ਦੇ ਕਾਲੇ ਸਿਆਹ ਹਨੇਰੇ ਦੇ ਕਾਰਨ ਉਨ੍ਹਾਂ ਲਈ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦਾ ਰਸਤਾ ਬਹੁਤ ਔਖਾ ਤੇ ਦੁਖਦਾਈ (ਜਮਾਂ ਵਾਲਾ ਰਸਤਾਹੈ l 
 
 مہا بِکھمُ جم پنّتھُ دُہیلا کالوُکھت موہ انّدھِیارا  
وکھم۔ دشوار۔ جسم پنتھ ۔ مجرمانہ راستہ ۔ دہیلا۔ مصیبتوں والا۔ کا لو کھت ۔ داغدار ۔ موہ اندھیار۔ محبت کا اندھیرا ۔
 
مجرمانہ اعمال کا راستہ نہایت دشوار گذار ہے ۔ جس میں بھاری دشواریاں ہیں جو محبت کے داغوں کی وجہ سے زندگی اندھیاری ہوجاتی ہے
 

 ਨਾਨਕ ਗੁਰਮੁਖਿ ਨਾਮੁ ਧਿਆਇਆ ਤਾ ਪਾਏ ਮੋਖ ਦੁਆਰਾ ॥੪॥
 
naanak gurmukh naam Dhi-aa-i-aa taa paa-ay mokh du-aaraa. ||4||
 O’ Nanak, one who follows the Guru’s teachings and meditates on Naam, finds the path of liberation from worldly attachments and vices. ||4||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਜੋ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਦਾ ਹੈ ਉਹ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਆਦਿਕ ਤੋਂ ਖ਼ਲਾਸੀ ਦਾ ਰਸਤਾ ਲੱਭ ਲੈਂਦਾ ਹੈ 
 
 نانک گُرمُکھِ نامُ دھِیائِیا تا پاۓ موکھ دُیارا  
موکھ ۔ نجات۔
 
اے نانک۔ جو مرید مرشد ہوکر الہٰی نام میں توجہ اور دھیان لگاتا ہے وہ راہ نجات پا لیتا ہے
 

 ਰਾਮੋ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਗੁਰੂ ਰਾਮੁ ਗੁਰਮੁਖੇ ਜਾਣੈ ਰਾਮ ॥
 
raamo raam naam guroo raam gurmukhay jaanai raam.
 One who realizes God’s Name through the Guru’s teachings comes to know that God’s Name itself is the Guru and Naam itself is God.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਰਾਹੀਂਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਨਾਲ ਡੂੰਘੀ ਸਾਂਝ ਪਾਂਦਾ ਹੈ,
 
 رامو رام نامُ گُروُ رامُ گُرمُکھے جانھےَ رام  
گر مکھے ۔ مریدان مرشد۔
 
جو انسان مرشد کے ذریعے الہٰی نام کی پہچان کر لیتا ہے اس سمجھ لیتا ہے اس کی قدر و قیمت سمجھ لیتا ہے 
 

 ਇਹੁ ਮਨੂਆ ਖਿਨੁ ਊਭ ਪਇਆਲੀ ਭਰਮਦਾ ਇਕਤੁ ਘਰਿ ਆਣੈ ਰਾਮ ॥
 
ih manoo-aa khin oobh paa-i-aalee bharmadaa ikat ghar aanai raam.
 
The mind which at one moment is in high spirits and in the next it is depressed, keeps wandering; the devotee attunes this mind to God.
 
ਉਹ ਆਪਣੇ ਇਸ ਮਨ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਲਿਆ ਟਿਕਾਂਦਾ ਹੈ ਜੇਹੜਾ ਹਰ ਵੇਲੇ ਕਦੇ ਅਹੰਕਾਰ ਵਿਚ ਤੇ ਕਦੇ ਢਹਿੰਦੀ ਕਲਾ ਵਿਚ ਭਟਕਦਾ ਫਿਰਦਾ ਹੈ
 
 اِہُ منوُیا کھِنُ اوُبھ پئِیالیِ بھرمدا اِکتُ گھرِ آنھےَ رام  
کھن ۔ کبھی ۔ اوبھ ۔ اونچا۔ بلندی پر ۔ پیال۔ پاتال۔ زمین کے نیچے ۔ بھرمدا۔ بھٹکتا ہے ۔ یعنی کبھی بلند خیالی اور مغرور اور کبھی پسماندیگ میں۔
 
کیونکہ یہ دل کبھی آسمان کی بلندیوں پر اور کبھی پستی کے گڑیوں میں بھٹکتا ہے یعنی کبھی خیالات بلند اور کبھی پسماندگی والے ہوتے ہیں الہٰی نام سے اس پر بھروسہ کرنے سے مستقل مزاجی پاتا ہے 
 

 ਮਨੁ ਇਕਤੁ ਘਰਿ ਆਣੈ ਸਭ ਗਤਿ ਮਿਤਿ ਜਾਣੈ ਹਰਿ ਰਾਮੋ ਨਾਮੁ ਰਸਾਏ ॥
 
 man ikat ghar aanai sabh gat mit jaanai har raamo naam rasaa-ay.
 
Yes, he attunes his mind to God and understands the worth of supreme spiritual status; and enjoy the bliss of God’s Name.
 
 ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਆਪਣੇ ਮਨ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਟਿਕਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈਉਹ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੀ ਹਰੇਕ ਮਰਯਾਦਾ ਨੂੰ ਸਮਝ ਲੈਂਦਾ ਹੈ ਤੇ ਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 
 منُ اِکتُ گھرِ آنھےَ سبھ گتِ مِتِ جانھےَ ہرِ رامو نامُ رساۓ  
الت گھر ۔ وحدت کا شیدائی ۔ گت مت۔ روحانیت اور شرع زندگی ۔ ہر رامونامور سائے ۔ الہٰی نام کا مزہ یا لطف لیتا ہے ۔
 
تب اسے اخلاقی و روحانی زندگی کے طرز عمل سمجھ آجاتےہیں وہ الہٰی نام کا لطف لیتا ہے ۔ 
 

 ਜਨ ਕੀ ਪੈਜ ਰਖੈ ਰਾਮ ਨਾਮਾ ਪ੍ਰਹਿਲਾਦ ਉਧਾਰਿ ਤਰਾਏ ॥
 
jan kee paij rakhai raam naamaa par-hilaad uDhaar taraa-ay.
 
God's Name preserves the honor of His devotees, just as He saved and emancipated His devotee-Prahlaad.
 
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਆਪਣੇ ਭਗਤ ਦੀ ਇੱਜ਼ਤ ਰੱਖਦਾ ਹੈਜਿਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਉਸ ਨੇ ਆਪਣੇ ਭਗਤ ਪ੍ਰਹਿਲਾਦ ਨੂੰ ਮੁਕਤ ਕੀਤਾ ਅਤੇ ਤਾਰਿਆ ਸੀ
 
 جن کیِ پیَج رکھےَ رام ناما پ٘رہِلاد اُدھارِ تراۓ  
بیچ ۔ عزت۔ رام ناما۔ الہٰی نام۔ ادھار۔ بچانا۔ ترائے ۔ کامیاب بنائے ۔
 
الہٰی نام ایسے انسان کے توقیر و عزت بچاتا ہے ۔ جیسے پر ہلاد جیسے 
 

 ਰਾਮੋ ਰਾਮੁ ਰਮੋ ਰਮੁ ਊਚਾ ਗੁਣ ਕਹਤਿਆ ਅੰਤੁ ਨ ਪਾਇਆ ॥
 
raamo raam ramo ram oochaa gun kehti-aa ant na paa-i-aa.
 
Keep meditating on God, who is the highest of all; by uttering God’s praises, no one has reached the limit of His virtues.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਸਭ ਤੋਂ ਉੱਚਾ ਹੈਸੋਹਣਾ ਹੀ ਸੋਹਣਾ ਹੈਬਿਆਨ ਕਰਦਿਆਂ ਕਰਦਿਆਂ ਉਸ ਦੇ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਅਖ਼ੀਰ ਨਹੀਂ ਲੱਭ ਸਕੀਦਾ
 
 رامو رامُ رمو رمُ اوُچا گُنھ کہتِیا انّتُ ن پائِیا  
اوچاگن ۔ بلند وصف۔ انت ۔ آخر۔
 
عاشقان الہٰی دشواریوں اور مشکلات سے بچا کر کامیابی عنایت فرمائی ہے ۔ جو بیان نہیں ہو سکتے ۔ 
 

 ਨਾਨਕ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਸੁਣਿ ਭੀਨੇ ਰਾਮੈ ਨਾਮਿ ਸਮਾਇਆ ॥੫॥
 
naanak raam naam sun bheenay raamai naam samaa-i-aa. ||5||
O’ Nanak, the devotees, who get drenched in God’s love by listening to His Name; they remain absorbed in God’s Name. ||5||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸੁਣ ਕੇ ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਭਿੱਜ ਗਏ, ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਵਿਚ ਹੀ ਲੀਨ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ 
 
 نانک رام نامُ سُنھِ بھیِنے رامےَ نامِ سمائِیا  
پھینے۔ لطف سے پرشار ہوئے ۔ رامے نام سمائیا۔ الہٰی نام میں محو ومجذوب ہوئے ۔
 
اے ناکک جن کے دل الہٰی نام سے پر لطف ہوجاتے ہیں وہ الہٰی نام میں محو ومجذوب رہتے ہیں
 

 ਜਿਨ ਅੰਤਰੇ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਵਸੈ ਤਿਨ ਚਿੰਤਾ ਸਭ ਗਵਾਇਆ ਰਾਮ ॥
 
jin antray raam naam vasai tin chintaa sabh gavaa-i-aa raam.
 
Those who realize God’s Name within their hearts, eradicate all their worries.
 
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ  ਵੱਸਦਾ ਹੈ ਉਹ ਆਪਣੀ ਹਰੇਕ ਕਿਸਮ ਦੀ ਚਿੰਤਾ ਦੂਰ ਕਰ ਲੈਂਦੇ ਹਨ,
 
 جِن انّترے رام نامُ ۄسےَ تِن چِنّتا سبھ گۄائِیا رام  
چنتا ۔ فکر ۔ تشویش ۔
 
جن کے دل میں الہٰی نام بس جاتا ہے ۔ ان کی تشویش اور فکر مٹ جاتے ہیں۔ 
 

 ਸਭਿ ਅਰਥਾ ਸਭਿ ਧਰਮ ਮਿਲੇ ਮਨਿ ਚਿੰਦਿਆ ਸੋ ਫਲੁ ਪਾਇਆ ਰਾਮ ॥
 
sabh arthaa sabh Dharam milay man chindi-aa so fal paa-i-aa raam.
 
They obtain all worldly wealth, all piety and the fruits of their mind’s desires.
 
ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਧਰਮ ਅਰਥ ਕਾਮ ਮੋਖ ਇਹ ਸਾਰੇ ਪਦਾਰਥ ਪ੍ਰਾਪਤ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨਉਹ ਮਨੁੱਖ ਜੋ ਕੁਝ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਚਿਤਵਦੇ ਹਨ ਉਹੀ ਫਲ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਮਿਲ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 
 سبھِ ارتھا سبھِ دھرم مِلے منِ چِنّدِیا سو پھلُ پائِیا رام  
ارتھا ۔ سرمایہ ۔ دولت ۔ دھرم۔ ہما قسم ۔کے فرض منصبی۔ من چندیا ۔ دلی خواہش کی مطابق ۔
 
انہیں ہر قسم کی دولت اور نعمتیں میسئر ہوجاتی ہے 
 

 ਮਨ ਚਿੰਦਿਆ ਫਲੁ ਪਾਇਆ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਧਿਆਇਆ ਰਾਮ ਨਾਮ ਗੁਣ ਗਾਏ ॥
 
man chindi-aa fal paa-i-aa raam naam Dhi-aa-i-aa raam naam gun gaa-ay.
 
They obtained the fruits of their heart’s desires by meditating on God's Name and they keep singing the Praises of God's Name.
 
ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮਸਿਮਰਨ ਦੁਆਰਾ ਉਹਨਾਂ ਨੇ ਮਨ ਚਿਤਵਿਆ ਫਲ ਪਾਇਆ ਅਤੇ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਦੀ ਕੀਰਤੀ ਗਾਉਦੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ,
 
 من چِنّدِیا پھلُ پائِیا رام نامُ دھِیائِیا رام نام گُنھ گاۓ  
دھیائیا ۔ توجہ دی ۔
 
اور دلی خواہش کے مطابق پھل پاتےہی۔ وہ الہٰی حمدثناہ کرتے رہتے ہیں۔
 

 ਦੁਰਮਤਿ ਕਬੁਧਿ ਗਈ ਸੁਧਿ ਹੋਈ ਰਾਮ ਨਾਮਿ ਮਨੁ ਲਾਏ ॥
 
durmat kabuDh ga-ee suDh ho-ee raam naam man laa-ay.
 
When they attuned their mind to God’s Name, their bad inclination and evil intellect went away, and they obtained understanding about righteous living.
 
ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਅੰਦਰੋਂ ਖੋਟੀ ਮਤਿ ਭੈੜੀ ਅਕਲ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੀ ਸੂਝ  ਜਾਂਦੀ ਹੈਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਵਿਚ ਆਪਣਾ ਮਨ ਜੋੜੀ ਰੱਖਦੇ ਹਨ
 
 دُرمتِ کبُدھِ گئیِ سُدھِ ہوئیِ رام نامِ منُ لاۓ  
 
درمت ۔ بدعقلی ۔ کبدھ ۔ بے علقی ۔ سکھائی۔ ساتھی ۔ مددگار۔ بھرم ۔ وہم وگامن۔ چوکا ۔ ختم ہوا۔ مٹالے ۔ سدھ ہوئی۔ سمجھ آئی ۔ رام نام من لائے ۔ الہٰی نام میں دل جوڑنے سے ۔
 
بدمعاشی اور بد عقلی ختم ہوکر روحانی زندگی بسر کرنے کی سمجھ آجاتی ہے ۔