Urdu-Page-441

ਧਾਵਤੁ ਥੰਮ੍ਹ੍ਹਿਆ ਸਤਿਗੁਰਿ ਮਿਲਿਐ ਦਸਵਾ ਦੁਆਰੁ ਪਾਇਆ ॥
 
Dhaavat thamiH-aa satgur mili-ai dasvaa du-aar paa-i-aa.
 
Upon meeting the true Guru and following his teaching, the wandering mind is held steady and it finds the tenth Gate (supreme spiritual status).
 
ਸੱਚੇ ਗੁਰਾਂ ਨੂੰ ਮਿਲ ਕੇ ਭਟਕਦਾ ਮਨ ਰੁਕ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਅਤੇ ਦਸਵਾਂ ਦੁਆਰ (ਉੱਚੀ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾਲੱਭ ਪੈਂਦਾ ਹੈ 
 
 دھاۄتُ تھنّم٘ہ٘ہِیا ستِگُرِ مِلِئےَ دسۄا دُیارُ پائِیا  
دسواں دوآر ۔ دسواں دروازہ مراد ذہن۔
 
سچے مرشد کے ملاپ سے بھٹکتا من رک جاتا ہےضمیر بیداری ہوجاتی ہے ۔ انسان ذہن نشین ہوجاتا ہے ۔
 

 ਤਿਥੈ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਭੋਜਨੁ ਸਹਜ ਧੁਨਿ ਉਪਜੈ ਜਿਤੁ ਸਬਦਿ ਜਗਤੁ ਥੰਮ੍ਹ੍ਹਿ ਰਹਾਇਆ ॥
 
tithai amrit bhojan sahj Dhun upjai jit sabad jagat thamiH rahaa-i-aa.
 
In that spiritual state, celestial melody resonates continuously which is the ambrosial food for the soul and through the Guru’s word, the mind remains unaffected by the worldly attachments
 
ਉਸ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਵਿਚ ਮਨ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੇਣ ਵਾਲੇ ਨਾਮ ਦੀ ਖ਼ੁਰਾਕ ਖਾਂਦਾ ਹੈਮਨ ਦੇ ਅੰਦਰ ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ ਦੀ ਰੌ ਚੱਲ ਪੈਂਦੀ ਹੈਅਤੇ ਗੁਰਸ਼ਬਦ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲਮਨ ਦੁਨੀਆ ਦੇ ਮੋਹ ਨੂੰ ਰੋਕ ਰੱਖਦਾ ਹੈ
 
 تِتھےَ انّم٘رِت بھوجنُ سہج دھُنِ اُپجےَ جِتُ سبدِ جگتُ تھنّم٘ہ٘ہِ رہائِیا  
انمرت۔ آبحیات۔ بھوجن۔ کھنا۔ بھج دھن۔ قدرتی نغمے ۔ اپجے ۔ پیدا ہوتے ہیں۔ جت سبد ۔ جس کلام سے ۔ جگت ۔ عالم دنیا۔ جہاں ۔ تھم ۔ سہارا۔
 
جہاں آب حیات مراد سچ اور حق سچ اورحقیقت اس کے لئے خوراک اور کھانا بن جاتا ہےا ور اس روحانی حالت میں قدرتی نغمے اور سازوں کی سی جھنکار مراد روحانی خوشی ۔ 
 

 ਤਹ ਅਨੇਕ ਵਾਜੇ ਸਦਾ ਅਨਦੁ ਹੈ ਸਚੇ ਰਹਿਆ ਸਮਾਏ ॥
 
tah anayk vaajay sadaa anad hai sachay rahi-aa samaa-ay. 
In that spiritual state, the mind is always in bliss as if many musical instruments are playing continually and the mind remains attuned to God.
 
ਉਥੇ ਮਨ ਦੇ ਅੰਦਰ ਸਦਾ ਆਨੰਦ ਬਣਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ, ਮਾਨੋ ਅਨੇਕਾਂ ਸੰਗੀਤਕ ਸਾਜ ਵੱਜ ਹੇ ਹਨ,,ਅਤੇ ਮਨ ਪ੍ਰਭੂ ਵਿਚ ਲੀਨ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 
 تہ انیک ۄاجے سدا اندُ ہےَ سچے رہِیا سماۓ  
بلولے اور جوش و خروش پیدا ہونے لگتا ہے اور دل ہر وقت الہٰی وجد میں رہتا ہے ۔ 

 

 ਇਉ ਕਹੈ ਨਾਨਕੁ ਸਤਿਗੁਰਿ ਮਿਲਿਐ ਧਾਵਤੁ ਥੰਮ੍ਹ੍ਹਿਆ ਨਿਜ ਘਰਿ ਵਸਿਆ ਆਏ ॥੪॥
 
i-o kahai naanak satgur mili-ai Dhaavat thamiH-aa nij ghar vasi-aa aa-ay. ||4||
 
This is what Nanak says, by meeting the true Guru, the wandering mind becomes steady and comes to dwell in the home of its own self (heart). ||4||
 
ਨਾਨਕ ਇਉਂ ਦੱਸਦਾ ਹੈ ਕਿ ਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪਏ ਤਾਂ ਇਹ ਭਟਕਦਾ ਮਨ (ਭਟਕਣ ਵਲੋਂਰੁਕ ਜਾਂਦਾ ਹੈਤੇ ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚ  ਟਿਕਦਾ ਹੈ 
 
 اِءُ کہےَ نانکُ ستِگُرِ مِلِئےَ دھاۄتُ تھنّم٘ہ٘ہِیا نِج گھرِ ۄسِیا آۓ 
 
نانک صاحب اس طرح فرماتے ہیں۔ سچے مرشد کے ملاپ سے بھٹکتا من رک جاتا ہے اور اصلی اور حقیقی ٹھکانے آجاتا ہے 
 

 ਮਨ ਤੂੰ ਜੋਤਿ ਸਰੂਪੁ ਹੈ ਆਪਣਾ ਮੂਲੁ ਪਛਾਣੁ ॥
 
man tooN jot saroop hai aapnaa mool pachhaan.
 
O’ my mind, you are the embodiment of the Divine Light (God), recognize your own true origin.
 
ਹੇ ਮੇਰੇ ਮਨਤੂੰ ਰੱਬੀ ਨੂਰ ਦੀ ਅੰਸ ਹੈਂ ਆਪਣੇ ਉਸ ਅਸਲੇ ਨਾਲ ਸਾਂਝ ਬਣਾ
 
 من توُنّ جوتِ سروُپُ ہےَ آپنھا موُلُ پچھانھُ  
من توجوت سروپ ہے ۔ اے دل تو نورانی ہے تیری شکل صورت روشنی ہے ۔ اپنا مول۔ اپنی اصلیت حقیقت ۔ پچھان ۔ سمجھ ۔
 
اے دل تو الہٰی نور کا ایک جز ہے اس لئے اپنی بنیاد کی پہچان کر 
 

 ਮਨ ਹਰਿ ਜੀ ਤੇਰੈ ਨਾਲਿ ਹੈ ਗੁਰਮਤੀ ਰੰਗੁ ਮਾਣੁ ॥
 
man har jee tayrai naal hai gurmatee rang maan. 
O’ mind, God is always with you; follow the Guru’s teachings and enjoy His love.
 
ਹੇ ਮਨਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਸਦਾ ਤੇਰੇ ਅੰਗਸੰਗ ਵੱਸਦਾ ਹੈਗੁਰੂ ਦੀ ਮਤਿ ਲੈ ਕੇ ਉਸ ਦੇ ਮਿਲਾਪ ਦਾ ਸੁਆਦ ਲੈ
 
 من ہرِ جیِ تیرےَ نالِ ہےَ گُرمتیِ رنّگُ مانھُ  
من ہرجی تیرے نال ہے ۔ خدا تیرا ساتھی اور ساتھ ہے ۔ گرمتی ۔ سبق مرشد سے ۔ رنگ مان ۔ روحانی سکون حاصل کر ۔
 
اے دل خدا تیرا ساتھی اور ساتھ ہے اس لئے اس سےا پنی اشتراکیت پدیا کر اور سبق مرشد سے
 اس کے ملاپ کا لطف لے ۔ 
 

 ਮੂਲੁ ਪਛਾਣਹਿ ਤਾਂ ਸਹੁ ਜਾਣਹਿ ਮਰਣ ਜੀਵਣ ਕੀ ਸੋਝੀ ਹੋਈ ॥
 
 mool pachhaaneh taaN saho jaaneh maran jeevan kee sojhee ho-ee.
 If you understand about your origin, then you realize the Master-God and you will understand what is being spiritually dead or spiritually alive.
 
ਜੇ ਤੂੰ ਆਪਣਾ ਅਸਲਾ ਸਮਝ ਲਏਂ ਤਾਂ ਉਸ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਤੇਰੀ ਡੂੰਘੀ ਜਾਣਪਛਾਣ ਬਣ ਜਾਏਗੀਤਦੋਂ ਤੈਨੂੰ ਇਹ ਸਮਝ ਭੀ  ਜਾਇਗੀ ਕਿ ਆਤਮਕ ਮੌਤ ਕੀਹ ਚੀਜ਼ ਹੈ ਤੇ ਆਤਮਕ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਕੀਹ ਹੈ
 
 موُلُ پچھانھہِ تاں سہُ جانھہِ مرنھ جیِۄنھ کیِ سوجھیِ ہوئیِ  
سوہ جانے ۔ آقا۔ مالک مراد خدا کی سمجھ ۔ جمن مرن کی سوجہی ہوئی ۔ موت و پیدائش کی سمجھ ۔
 
اپنی بنیاد اور اصلیت پہچان کر خدا کا پتہ چلتا ہے اور پیدائش و موت کی سمجھ آتی ہے ۔ کہ روحانی موت کیا ہے اور زندگی کیا ہے 
 

 ਗੁਰ ਪਰਸਾਦੀ ਏਕੋ ਜਾਣਹਿ ਤਾਂ ਦੂਜਾ ਭਾਉ ਨ ਹੋਈ ॥
 
gur parsaadee ayko jaaneh taaN doojaa bhaa-o na ho-ee. 
By the Guru’s grace, if you come to realize that there is only one God, then no other attachment would arise in you.
 
ਜੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਇਕ ਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਡੂੰਘੀ ਸਾਂਝ ਪਾ ਲਏਂਤਾਂ ਤੇਰੇ ਅੰਦਰ ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਕੋਈ ਹੋਰ ਮੋਹ ਪ੍ਰਬਲ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕੇਗਾ
 
 گُر پرسادیِ ایکو جانھہِ تاں دوُجا بھاءُ ن ہوئیِ  
گر پرسادی ۔ رحمتد مرشد سے ایکو جانے ۔ واحد اور وحدت کی سمجھ پائے ۔ تاں دوجا بھاو نہ ہوئی ۔ تو دوئی دوئش اور خدا کے علاوہ دوسروں سے محبت نہیں بنتی ۔
 
اے دل اگر تو اپنی بنیاد کو سمجھ لے تیرا دوئی دوئش سے اور خا کے علاوہ کسی دیگر سے محبت نہ ہوگی اور رحمت مرشد سے وحدت اور واحد خدا کی پہچان ہویگ تو دل کو ٹھنڈ پہنچے گی
 

 ਮਨਿ ਸਾਂਤਿ ਆਈ ਵਜੀ ਵਧਾਈ ਤਾ ਹੋਆ ਪਰਵਾਣੁ ॥
 
man saaNt aa-ee vajee vaDhaa-ee taa ho-aa parvaan. 
When peace prevails in the mind and the sounds of joy resounds within, then you would be acclaimed in God’s presence.
 
ਜਦੋਂ ਮਨ ਵਿਚ ਸ਼ਾਂਤੀ ਪੈਦਾ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਜਦੋਂ ਇਸ ਦੇ ਅੰਦਰ ਚੜ੍ਹਦੀ ਕਲਾ ਪ੍ਰਬਲ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਤਦੋਂ ਇਹ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਹਜ਼ੂਰੀ ਵਿਚ ਕਬੂਲ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 
 منِ ساںتِ آئیِ ۄجیِ ۄدھائیِ تا ہویا پرۄانھُ  
من سانت آی ۔ دل نے سکون پائیا۔ وجی بدھائی۔ فوت افزوں ہوئی ۔ پروان ۔ منظور۔
 
تب دل کو اتشاہ اور جوش و خروش ملتا ہے اور الہٰی حضور قبول اور منظور ہو جاتا ہے ۔ 
 

 ਇਉ ਕਹੈ ਨਾਨਕੁ ਮਨ ਤੂੰ ਜੋਤਿ ਸਰੂਪੁ ਹੈ ਅਪਣਾ ਮੂਲੁ ਪਛਾਣੁ ॥੫॥
 
i-o kahai naanak man tooN jot saroop hai apnaa mool pachhaan. ||5||
 
This is what Nanak says: O’ my mind, you are the embodiment of the Divine Light-God, recognize your own true origin. ||5||
  
ਨਾਨਕ ਇਉਂ ਦੱਸਦਾ ਹੈਹੇ ਮੇਰੇ ਮਨਤੂੰ ਰੱਬੀ ਨੂਰ ਦੀ ਅੰਸ ਹੈਂ ਆਪਣੇ ਉਸ ਅਸਲੇ ਨਾਲ ਸਾਂਝ ਬਣਾ 
 
 اِءُ کہےَ نانکُ من توُنّ جوتِ سروُپُ ہےَ اپنھا موُلُ پچھانھُ  
مول ۔ بنیاد ۔
 
نانک صاحب کا فرمان اس طرح ہے کہ سچے مرشد کے ملاپ سے بھٹکتے دل کو روک پڑتی ہے ) ۔ اے میرے دل تو اس خدا کے نور کا ایک جز ہے جو بھاری نور اور نورانی ہے لہذا اس اپنی شراکت پیدا کر۔
 
 

 ਮਨ ਤੂੰ ਗਾਰਬਿ ਅਟਿਆ ਗਾਰਬਿ ਲਦਿਆ ਜਾਹਿ ॥
 
 man tooN gaarab ati-aa gaarab ladi-aa jaahi.
 O’ mind, you are so full of ego and you would depart from here loaded with ego.
 
ਹੇ ਮਨਤੂੰ ਅਹੰਕਾਰ ਨਾਲ ਲਿਬੜਿਆ ਪਿਆ ਹੈਂਅਹੰਕਾਰ ਨਾਲ ਲੱਦਿਆ ਹੋਇਆ ਹੀ (ਜਗਤ ਤੋਂਚਲਾ ਜਾਵੇਂਗਾ,
 
 من توُنّ گاربِ اٹِیا گاربِ لدِیا جاہِ  
گاربھ ۔ غرور۔ تکبر۔
 
اے دل تو غرور اور تکبر میں پیوست ہوکر اور غرور اور تکبر کے بوجھ اُٹھائے ہوئے اس جہاں سے رخصت ہو جائے گا۔ 
 

 ਮਾਇਆ ਮੋਹਣੀ ਮੋਹਿਆ ਫਿਰਿ ਫਿਰਿ ਜੂਨੀ ਭਵਾਹਿ ॥
 
maa-i-aa mohnee mohi-aa fir fir joonee bhavaahi.
 
The fascinating Maya has enticed you, because of this you would go through many births again and again.
 
ਸੋਹਣੀ ਮਾਇਆ ਨੇ ਤੈਨੂੰ ਮੋਹ ਵਿਚ ਫਸਾਇਆ ਹੋਇਆ ਹੈ (ਨਤੀਜਾ ਇਹ ਨਿਕਲੇਗਾ ਕਿਤੈਨੂੰ ਮੁੜ ਮੁੜ ਅਨੇਕਾਂ ਜੂਨਾਂ ਵਿਚ ਪਾਇਆ ਜਾਇਗਾ
 
 مائِیا موہنھیِ موہِیا پھِرِ پھِرِ جوُنیِ بھۄاہِ  
موہنی موہیا۔ محبت میں کرفتار کرنے والی کی گرفت میں ۔ اٹیا۔ غیرو ز میں پیوست۔ پھر پھر جونی ۔ بھوا ہے ۔ تناسخ میں پڑیگا۔
 
دل کش مائیا نے تجھے اپنی محبت میں جکڑ رکھا ہے ۔ اس لئے تناسخ میں پڑا رہیگا
 

 ਗਾਰਬਿ ਲਾਗਾ ਜਾਹਿ ਮੁਗਧ ਮਨ ਅੰਤਿ ਗਇਆ ਪਛੁਤਾਵਹੇ ॥
 
gaarab laagaa jaahi mugaDh man ant ga-i-aa pachhutaavhay. 
O’ foolish mind, when you would depart from here inflated with ego, then you would repent in the end.
 
ਹੇ ਮੂਰਖ ਮਨਜਦੋਂ ਤੂੰ ਅਹੰਕਾਰ ਵਿਚ ਫਸਿਆ ਹੋਇਆ ਹੀ (ਇਥੋਂਤੁਰੇਂਗਾ ਤਾਂ ਤੁਰਨ ਵੇਲੇ ਹੱਥ ਮਲੇਂਗਾ,
 
 گاربِ لاگا جاہِ مُگدھ من انّتِ گئِیا پچھُتاۄہے  
گاربھ لاگا جاہے ۔غرور و تکبر میں مستفر ق ۔ مگدھ ۔ جاہل۔ انت۔ آخر ۔
 
غرور و تکبر میں مستفر ق اور اخر کار پچھتا ئیگا ۔ 
 

 ਅਹੰਕਾਰੁ ਤਿਸਨਾ ਰੋਗੁ ਲਗਾ ਬਿਰਥਾ ਜਨਮੁ ਗਵਾਵਹੇ ॥
 
 ahaNkaar tisnaa rog lagaa birthaa janam gavaavhay.
 You are afflicted with the diseases of ego and intense desires; you are wasting your life away in vain.
 
ਤੈਨੂੰ ਅਹੰਕਾਰ ਚੰਬੜਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ ਤੈਨੂੰ ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਦਾ ਰੋਗ ਲੱਗਾ ਹੋਇਆ ਹੈ ਤੂੰ (ਇਹ ਮਨੁੱਖਾਜਨਮ ਵਿਅਰਥ ਗਵਾ ਰਿਹਾ ਹੈਂ
 
 اہنّکارُ تِسنا روگُ لگا بِرتھا جنمُ گۄاۄہے  
اہنکار ۔ ترشنا۔ غرور اور خواہشات ۔ روگ بیماری ۔ برتھا۔ بیفائدہ ۔جنم زندگی ۔
 
تجھے تکبر غرور اور لالچ میں اپنی زندگی بے فائدہ بیکار گنوا رہا ہے ۔ جو بھاری بیماری ہے ۔ ۔
 

 ਮਨਮੁਖ ਮੁਗਧ ਚੇਤਹਿ ਨਾਹੀ ਅਗੈ ਗਇਆ ਪਛੁਤਾਵਹੇ ॥
 
manmukh mugaDh cheeteh naahee agai ga-i-aa pachhutaavhay.
 
O’ foolish self-willed mind, you do not remember God, you would repent hereafter.
 
ਹੇ ਆਪਹੁਦਰੇ ਮੂਰਖ ਮਨਤੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨੂੰ ਨਹੀਂ ਸਿਮਰਦਾਪਰਲੋਕ ਜਾ ਕੇ ਅਫਸੋਸ ਕਰੇਂਗਾ 
 
 منمُکھ مُگدھ چیتہِ ناہیِ اگےَ گئِیا پچھُتاۄہے  
چیتہہ ناہی ۔ یاد نہیں کرتا ۔
 
مرید من جاہل جہالت میں خدا کو یاد نہیں کرتا بوقت آخرت و رخصت علام پچھتائیگا ۔ 
 

 ਇਉ ਕਹੈ ਨਾਨਕੁ ਮਨ ਤੂੰ ਗਾਰਬਿ ਅਟਿਆ ਗਾਰਬਿ ਲਦਿਆ ਜਾਵਹੇ ॥੬॥
 
i-o kahai naanak man tooN gaarab ati-aa gaarab ladi-aa jaavhay. ||6||
 
This is what Nanak says, O’ my mind, you are inflated with ego and you would depart from this world laden with ego. ||6|| 
 
 اِءُ کہےَ نانکُ من توُنّ گاربِ اٹِیا گاربِ لدِیا جاۄہے  
نانک کا فرمان اس طرح ہے ۔ کہ اے دل غرور اور تکبر میں اور اسکا بوجھ اُتھائے ہوئے اس جہان سے رخصت ہو رہا ہے
 

 ਮਨ ਤੂੰ ਮਤ ਮਾਣੁ ਕਰਹਿ ਜਿ ਹਉ ਕਿਛੁ ਜਾਣਦਾ ਗੁਰਮੁਖਿ ਨਿਮਾਣਾ ਹੋਹੁ ॥
 
man tooN mat maan karahi je ha-o kichh jaandaa gurmukh nimaanaa hohu. 
O’ my mind, do not feel proud that I know something. Instead, follow the Guru’s teachings and remain humble.
 
ਹੇ ਮਨਵੇਖੀਂਕਿਤੇ ਇਹ ਮਾਣ ਨਾਹ ਕਰ ਬੈਠੀਂ ਕਿ ਮੈਂ ਕੁਝ ਜਾਣਦਾ ਹਾਂਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਮਾਣ ਤਿਆਗੀ ਰੱਖ
 
 من توُنّ مت مانھُ کرہِ جِ ہءُ کِچھُ جانھدا گُرمُکھِ نِمانھا ہوہُ 
 
اے دل ایسا وقار نہ بنا کر میں سب کچھ جانتا ہوں اور دانشمند ہوں مرید مرشد ہوکر وقار و توقیر چھوڑ دے ۔
 

 ਅੰਤਰਿ ਅਗਿਆਨੁ ਹਉ ਬੁਧਿ ਹੈ ਸਚਿ ਸਬਦਿ ਮਲੁ ਖੋਹੁ ॥
 
 antar agi-aan ha-o buDh hai sach sabad mal khohu.
 Within you are ignorance and an egoistic intellect; cleanse this dirt by attuning to God through the true Guru’s word.
 
ਤੇਰੇ ਅੰਦਰ 'ਮੈਂਮੈਂਕਰਨ ਵਾਲੀ ਅਕਲ ਹੈਸਦਾਥਿਰ ਹਰਿਨਾਮ ਵਿਚ ਜੁੜ ਕੇ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਵਿਚ ਟਿਕ ਕੇ ਇਸ ਮੈਲ ਨੂੰ ਦੂਰ ਕਰ
 
 انّترِ اگِیانُ ہءُ بُدھِ ہےَ سچِ سبدِ ملُ کھوہُ  
دل میں نادانی اور اپنے آپ کو جتانے اور طاہر کر نے والی عقل و شعور ہے سچے کلام سے ناپاکیزگی دور ہوتی ہے ۔ 

 

 ਹੋਹੁ ਨਿਮਾਣਾ ਸਤਿਗੁਰੂ ਅਗੈ ਮਤ ਕਿਛੁ ਆਪੁ ਲਖਾਵਹੇ ॥
 
hohu nimaanaa satguroo agai mat kichh aap lakhaavhay.
 
So be humble and surrender to the true Guru; see that you do not assert your self-conceit at all.
 
ਹੇ ਮਨਨਿਰਮਾਣ ਹੋ ਕੇ ਗੁਰੂ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਢਹਿ ਪਉ ਵੇਖੀਂਕਿਤੇ ਆਪਣਾ ਆਪ ਜਤਾਣ ਨਾਹ ਲੱਗ ਪਈਂ
 
 ہوہُ نِمانھا ستِگُروُ اگےَ مت کِچھُ آپُ لکھاۄہے  
سچے مرشد کے رو برو اپنے آپ کو ظاہر نہ کر 

 

 ਆਪਣੈ ਅਹੰਕਾਰਿ ਜਗਤੁ ਜਲਿਆ ਮਤ ਤੂੰ ਆਪਣਾ ਆਪੁ ਗਵਾਵਹੇ ॥
 
aapnai ahaNkaar jagat jali-aa mat tooN aapnaa aap gavaavhay.
 
The world is consumed by self-conceit; see that you don’t lose your own self.
 
ਜਗਤ ਆਪਣੇ ਹੀ ਅਹੰਕਾਰ ਵਿਚ ਸੜ ਰਿਹਾ ਹੈਵੇਖੀਂ ਕਿਤੇ ਤੂੰ ਭੀ ਆਪਣੇ ਆਪ ਦਾ ਨਾਸ ਨਾ ਕਰ ਲਈਂ
 
 آپنھےَ اہنّکارِ جگتُ جلِیا مت توُنّ آپنھا آپُ گۄاۄہے  
اپنے تکبر تمام عالم اپنے حسد و تکبر میں جل رہا ہے کہیں اپنا آپ تو بھی نہ کھو بیٹھے ۔ 

 

 ਸਤਿਗੁਰ ਕੈ ਭਾਣੈ ਕਰਹਿ ਕਾਰ ਸਤਿਗੁਰ ਕੈ ਭਾਣੈ ਲਾਗਿ ਰਹੁ ॥
 
 satgur kai bhaanai karahi kaar satgur kai bhaanai laag rahu.
 You should do whatever pleases the true Guru and live by his teachings.
 
ਹੇ ਮਨਤੂੰ ਗੁਰੂ ਦੇ ਹੁਕਮ ਵਿਚ ਤੁਰ ਅਤੇ ਗੁਰੂ ਦੇ ਹੁਕਮ ਵਿਚ ਟਿਕਿਆ ਰਹੁ
 
 ستِگُر کےَ بھانھےَ کرہِ کار ستِگُر کےَ بھانھےَ لاگِ رہُ  
فرمان مرشد میں رہ کر کام کر اور اس کی رضا میں رہ 

 

 ਇਉ ਕਹੈ ਨਾਨਕੁ ਆਪੁ ਛਡਿ ਸੁਖ ਪਾਵਹਿ ਮਨ ਨਿਮਾਣਾ ਹੋਇ ਰਹੁ ॥੭॥
 
i-o kahai naanak aap chhad sukh paavahi man nimaanaa ho-ay rahu. ||7||
 
This is what Nanak says, that O’ my mind, attain celestial peace by renouncing your self-conceit and remain humble. ||7||
 
(ਹੇ ਮਨਤੈਨੂੰਨਾਨਕ ਇਉਂ ਸਮਝਾਂਦਾ ਹੈਹੇ ਮਨਅਹੰਕਾਰ ਛੱਡ ਦੇ,ਅਤੇ ਮਸਕੀਨ ਬਣਿਆ ਰਹੁ, ਅਹੰਕਾਰ ਛੱਡ ਕੇ ਸੁਖ ਪਾਵੇਂਗਾ 
 
 اِءُ کہےَ نانکُ آپُ چھڈِ سُکھ پاۄہِ من نِمانھا ہوءِ رہُ 
 
نانک اس طرح سمجھاتا ہے کہ غرور چھوڑنے سے سکھ حاصل ہوتا ہے
 

 ਧੰਨੁ ਸੁ ਵੇਲਾ ਜਿਤੁ ਮੈ ਸਤਿਗੁਰੁ ਮਿਲਿਆ ਸੋ ਸਹੁ ਚਿਤਿ ਆਇਆ ॥
 
Dhan so vaylaa jit mai satgur mili-aa so saho chit aa-i-aa.
 
Blessed was that time, when I met the True Guru and realized the Master-God dwelling in my consciousness;
 
ਉਹ ਵੇਲਾ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲਾ ਸੀ ਜਦੋਂ ਮੈਨੂੰ ਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪਿਆ ਸੀ ਤੇਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਉਹ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਮੇਰੇ ਚਿੱਤ ਵਿਚ  ਵੱਸਿਆ;
 
 دھنّنُ سُ ۄیلا جِتُ مےَ ستِگُرُ مِلِیا سو سہُ چِتِ آئِیا  
دھن۔ مبارک ۔ویلا۔ وقت۔ جت۔ جب۔ سو سوہ ۔ وہ مالک ۔ خدا۔ چت آئیا۔ دلمیں بسا ۔ یاد
 آئیا ۔
 
وہ وقت مبار کباد کا مستحق ہے جس وقت میرا سچےمرشد ملاپ ہوا اور سچا خدا دلمیں بسا اس کی یاد آئی 
 

 ਮਹਾ ਅਨੰਦੁ ਸਹਜੁ ਭਇਆ ਮਨਿ ਤਨਿ ਸੁਖੁ ਪਾਇਆ ॥
 
mahaa anand sahj bha-i-aa man tan sukh paa-i-aa.
then great bliss prevailed intuitively and I felt peace both in my mind and heart.
 
ਸੁਭਾਵਕ ਹੀ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਬੜਾ ਆਨੰਦ ਪੈਦਾ ਹੋਇਆਮੇਰੇ ਮਨ ਨੇ ਮੇਰੇ ਹਿਰਦੇ ਨੇ ਸੁਖ ਅਨੁਭਵ ਕੀਤਾ
 
 مہا اننّدُ سہجُ بھئِیا منِ تنِ سُکھُ پائِیا  
مہا انند ۔ بھاری سکون۔ من تن ۔ دل وجان۔ سکھ ۔ آرام وآسائش ۔
 
بھاری سکون اور خوشی محسوس ہوئی اور دل وجان نے سکھ محسوس کیا 
 

 ਸੋ ਸਹੁ ਚਿਤਿ ਆਇਆ ਮੰਨਿ ਵਸਾਇਆ ਅਵਗਣ ਸਭਿ ਵਿਸਾਰੇ ॥
 
so saho chit aa-i-aa man vasaa-i-aa avgan sabh visaaray.
 
When I realized the Master-God in my consciousness; the Guru enshrined Him within my mind and forgave all my sins.
 
ਉਹ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਮੇਰੇ ਚਿੱਤ ਵਿਚ  ਵੱਸਿਆ, (ਗੁਰੂ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰਮੇਰੇ ਮਨ ਵਿਚ ਵਸਾ ਦਿੱਤਾਤੇ ਮੇਰੇ ਸਾਰੇ ਹੀ ਔਗੁਣ ਭੁਲਾ ਦਿੱਤੇ
 
 سو سہُ چِتِ آئِیا منّنِ ۄسائِیا اۄگنھ سبھِ ۄِسارے  
اوگن۔ بد اوصاف۔ گناہ گاریاں۔
 
اور تمام گناہ گاریاں اور بداوصاف بھلا کر خدا دلمیں وسائیا۔ ۔
 

 ਜਾ ਤਿਸੁ ਭਾਣਾ ਗੁਣ ਪਰਗਟ ਹੋਏ ਸਤਿਗੁਰ ਆਪਿ ਸਵਾਰੇ ॥
 
jaa tis bhaanaa gun pargat ho-ay satgur aap savaaray.
 
When it pleased Him, virtues appeared in me and the Guru Himself adorned me.
 
ਜਦੋਂ ਉਸ ਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗਾ ਮੇਰੇ ਵਿੱਚ ਨੇਕੀਆਂ ਜ਼ਾਹਰ ਹੋ ਆਈਆਂ ਅਤੇ ਗੁਰੂ ਨੇ ਖੁਦ ਮੈਨੂੰ ਸਸ਼ੋਭਤ ਕਰ ਦਿੱਤਾ,
 
 جا تِسُ بھانھا گُنھ پرگٹ ہوۓ ستِگُر آپِ سۄارے  
بھانا۔ مرضی ۔ رضا۔ پرگٹ۔ ظاہر۔ سوارے ۔ درست فرمائے ۔
 
جب الہٰی رضا ہوئی تو اوصاف ا س کے دلمیں ظہور میں آجاتے ہیں پیدا ہوتے ہیں۔ سچا مرشد درست کرتا ہے ۔ اور انسنای زندگی اچھی ہوجاتی ہے ۔ 
 

 ਸੇ ਜਨ ਪਰਵਾਣੁ ਹੋਏ ਜਿਨ੍ਹ੍ਹੀ ਇਕੁ ਨਾਮੁ ਦਿੜਿਆ ਦੁਤੀਆ ਭਾਉ ਚੁਕਾਇਆ ॥
 
say jan parvaan ho-ay jinHee ik naam dirhi-aa dutee-aa bhaa-o chukaa-i-aa.
The devotees, who meditate only on God’s Name and renounce the love of duality (Maya), become approved in God’s presence.
 
ਜੇਹੜੇ ਮਨੁੱਖ ਸਿਰਫ਼ ਹਰਿਨਾਮ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਪੱਕਾ ਕਰ ਲੈਂਦੇ ਹਨਤੇ ਮਾਇਆ ਦਾ ਮੋਹ ਅੰਦਰੋਂ ਦੂਰ ਕਰ ਲੈਂਦੇ ਹਨ ਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਦਰਗਹ ਵਿਚ ਕਬੂਲ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨ
 
 سے جن پرۄانھُ ہوۓ جِن٘ہ٘ہیِ اِکُ نامُ دِڑِیا دُتیِیا بھاءُ چُکائِیا  
پروان ۔ منظور ۔ درڑیا ۔ پختہ کیا۔ دتیا بھاؤ۔ دوسروں سے محبت ۔ چکائیا ۔ ختم کیا۔
 
جو انسان الہٰی نام سچ اور حقیقت دلمیں بسا لیتے ہیں بارگاہ الہٰی میں مقبول ہوجاتے ہیں۔ 
 

 ਇਉ ਕਹੈ ਨਾਨਕੁ ਧੰਨੁ ਸੁ ਵੇਲਾ ਜਿਤੁ ਮੈ ਸਤਿਗੁਰੁ ਮਿਲਿਆ ਸੋ ਸਹੁ ਚਿਤਿ ਆਇਆ ॥੮॥
 
i-o kahai naanak Dhan so vaylaa jit mai satgur mili-aa so saho chit aa-i-aa. ||8||
This is what Nanak says, blessed was that time when I met the true Guru and realized the master-God in my mind ||8||
 
ਨਾਨਕ ਇਉਂ ਆਖਦਾ ਹੈਭਾਗਾਂ ਵਾਲਾ ਸੀ ਉਹ ਵੇਲਾ ਜਦੋਂ ਮੈਨੂੰ ਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪਿਆ ਸੀ ਤੇ (ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲਉਹ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਮੇਰੇ ਚਿੱਤ ਵਿਚ  ਵੱਸਿਆ ਸੀ 
 
 اِءُ کہےَ نانکُ دھنّنُ سُ ۄیلا جِتُ مےَ ستِگُرُ مِلِیا سو سہُ چِتِ آئِیا  
نانک صاحب کا فرمان ہے کہ بارک تھا وہ وقت جب ملاپ مرشد ہو ا جس کی رحمت و عنیات سے خدا دل میں بسا
 

 ਇਕਿ ਜੰਤ ਭਰਮਿ ਭੁਲੇ ਤਿਨਿ ਸਹਿ ਆਪਿ ਭੁਲਾਏ ॥
 
ik jant bharam bhulay tin seh aap bhulaa-ay.
 
Many people wander around deluded by doubt; the Master-God Himself has misled them.
 
ਅਨੇਕਾਂ ਜੀਵ ਮਾਇਆ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਵਿਚ ਪੈ ਕੇ ਕੁਰਾਹੇ ਪਏ ਹੋਏ ਹਨਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪ ਹੀ ਕੁਰਾਹੇ ਪਾਏ ਹੋਏ ਹਨ,
 
 اِکِ جنّت بھرمِ بھُلے تِنِ سہِ آپِ بھُلاۓ  
جنت۔ جاندار مراد انسان ۔ بھرم۔ وہم وگمان ۔ بھولے ۔ گمراہ ۔ سیہہ ۔ خڈا۔ بھلائے ۔ گمراہ کیا۔
 
بیشمار انسان وہم وگامن کی گمراہی میں ہیں جنہیں خدا نے خود گمراہ کیا ہوا ہے ۔ 
 

 ਦੂਜੈ ਭਾਇ ਫਿਰਹਿ ਹਉਮੈ ਕਰਮ ਕਮਾਏ ॥
 
doojai bhaa-ay fireh ha-umai karam kamaa-ay.
 
They wander around in the love of Maya (duality) and do their deeds in ego.
 
ਅਜੇਹੇ ਜੀਵ ਹਉਮੈ ਦੇ ਆਸਰੇ ਕੰਮ ਕਰ ਕਰ ਕੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਭਟਕਦੇ ਹਨ
 
 دوُجےَ بھاءِ پھِرہِ ہئُمےَ کرم کماۓ  
دوجے بھائے ۔ دنیاوی دولت کی محبت میں۔ پھریہہ۔ بھٹکتے پھرتے ہیں ۔ ہونمے کرم۔ اعمال خود پسندی ۔
 
ایسے انسان دوئی دوئش اور اعمال خود پسندی میں ملو ث بھٹکت پھرتے ہیں۔ 
 

 ਤਿਨਿ ਸਹਿ ਆਪਿ ਭੁਲਾਏ ਕੁਮਾਰਗਿ ਪਾਏ ਤਿਨ ਕਾ ਕਿਛੁ ਨ ਵਸਾਈ ॥
 
tin seh aap bhulaa-ay kumaarag paa-ay tin kaa kichh na vasaa-ee.
The Master-God Himself has strayed them and put them on the wrong path, there is nothing under their control.
 
ਉਸ ਖਸਮ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪ (ਉਹਨਾਂ ਨੂੰਸਹੀ ਰਸਤੇ ਤੋਂ ਖੁੰਝਾਇਆ ਹੋਇਆ ਹੈ ਤੇ ਕੁਰਾਹੇ ਪਾਇਆ ਹੋਇਆ ਹੈਉਹਨਾਂ ਜੀਵਾਂ ਦਾ ਕੋਈ ਜ਼ੋਰ ਨਹੀਂ ਚੱਲਦਾ
 
 تِنِ سہِ آپِ بھُلاۓ کُمارگِ پاۓ تِن کا کِچھُ ن ۄسائیِ  
کمارگ۔ غلط راستے ۔ وسائی ۔ زور۔
 
انہیں خدا نے خود گمراہی میں ڈال کر غلط راستے پر ڈال رکھا ہے ان کا اس میں کوئی زور نہیں چلتا ۔
 

 ਤਿਨ ਕੀ ਗਤਿ ਅਵਗਤਿ ਤੂੰਹੈ ਜਾਣਹਿ ਜਿਨਿ ਇਹ ਰਚਨ ਰਚਾਈ ॥
 
tin kee gat avgat tooNhai jaaneh jin ih rachan rachaa-ee.
You alone, who has created the creation, know their high or low state of mind.
 
ਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਉਹਨਾਂ ਦੀ ਚੰਗੀ ਮੰਦੀ ਆਤਮਕ ਹਾਲਤ ਜਾਣਦਾ ਹੈਂਜਿਸ ਨੇ ਇਹ ਜਗਤਰਚਨਾ ਰਚੀ ਹੈ, 
 
 تِن کیِ گتِ اۄگتِ توُنّہےَ جانھہِ جِنِ اِہ رچن رچائیِ  
گت ۔ اوگت ۔ نیک و بد حالت ۔ا چھا یا بھرا اخلاق ۔ رچن رچائی ۔ جس نے قائنات قدرت پیدا کی ۔
 
اے خدا جو تو نے یہ عالم پیدا کیا ہے اس کے نیک و بد حالات کے متعلق تو ہی جانتا ہے ۔ 
 

 ਹੁਕਮੁ ਤੇਰਾ ਖਰਾ ਭਾਰਾ ਗੁਰਮੁਖਿ ਕਿਸੈ ਬੁਝਾਏ ॥
 
hukam tayraa kharaa bhaaraa gurmukh kisai bujhaa-ay.
Your command is truly strict and it is only a rare person whom You cause to understand this command through the Guru’s teachings.
 
ਤੇਰਾ ਹੁਕਮ ਬੜਾ ਡਾਢਾ ਹੈ ਕਿਸੇ ਵਿਰਲੇ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲੇ ਨੂੰ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪਾ ਕੇ ਆਪਣਾ ਹੁਕਮ ਸਮਝਾਂਦਾ ਹੈ
 
 ہُکمُ تیرا کھرا بھارا گُرمُکھِ کِسےَ بُجھاۓ  
کھر ابھار۔ نہایت وزند ار۔ واجب ۔ گورمکھ ۔ مرید مرشد۔ بجھائے ۔ سمجھاتا ہے ۔
 
اے خدا تیرا فرمان بھاری و زندار اور معنی خیز ہے ۔ مرید مرشد ہی کسی کو سمجھاتا ہے ۔ 
 

 ਇਉ ਕਹੈ ਨਾਨਕੁ ਕਿਆ ਜੰਤ ਵਿਚਾਰੇ ਜਾ ਤੁਧੁ ਭਰਮਿ ਭੁਲਾਏ ॥੯॥
 
i-o kahai naanak ki-aa jant vichaaray jaa tuDh bharam bhulaa-ay. ||9||
This is what Nanak says, what can the poor creatures do, when You Yourself mislead them into doubt? ||9||
 
 ਨਾਨਕ ਇਉਂ ਆਖਦਾ ਹੈਜੇ ਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਮਾਇਆ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਵਿਚ ਪਾਇਆ ਹੋਇਆ ਹੈਤਾਂ ਇਹ ਵਿਚਾਰੇ ਕੀ ਕਰ ਸਕਦੇ ਹਨ
 
 اِءُ کہےَ نانکُ کِیا جنّت ۄِچارے جا تُدھُ بھرمِ بھُلاۓ  
جاتدھ بھرم بھالئے ۔ جب تو نے ہی وہم وگامن میں گمراہ کیا ہے ۔
 
نانک کافران ہے کہ اے خدا تو نے ہی انسان کو گمراہ کر کے بھٹکن میں ڈال رکھا ہے اسمیں مغور انسان کا کیا زور چلتا ہے