Urdu-Page-440

ਪਿਰੁ ਸੰਗਿ ਕਾਮਣਿ ਜਾਣਿਆ ਗੁਰਿ ਮੇਲਿ ਮਿਲਾਈ ਰਾਮ ॥
 
pir sang kaaman jaani-aa gur mayl milaa-ee raam.
 
That soul-bride unites with God, who through the Guru’s teachings realizes His presence around her.
 
ਜਿਸ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਨੂੰ ਗੁਰੂ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੋੜ ਦਿੱਤਾ ਉਸ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਅੰਗਸੰਗ ਵੱਸਦਾ ਪਛਾਣ ਲਿਆ,
 
 پِرُ سنّگِ کامنھِ جانھِیا گُرِ میلِ مِلائیِ رام  
سنگ ۔ ساتھ ۔ گر۔ مرشد۔ میل۔الہٰی ملاپ ۔
 
جس انسان کا مرشد نے الہٰی ملاپ کراد یا اس نے خدا کو اپنا ساتھ بستا پہنچان لیا وہ روحانی طور پر سبق مرشد کو اپنے ساتھ بستا پہچان لیا 
 

 ਅੰਤਰਿ ਸਬਦਿ ਮਿਲੀ ਸਹਜੇ ਤਪਤਿ ਬੁਝਾਈ ਰਾਮ ॥
 
antar sabad milee sehjay tapat bujhaa-ee raam.
 
After uniting with God through the Guru’s word, the agony of separation from God within her intuitively calmed down.
 
 ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਇਕਮਿਕ ਹੋ ਗਈਅਡੋਲ ਹੀ ਉਸ ਦੇ ਅੰਦਰੋਂ ਵਿਕਾਰਾਂ ਵਾਲੀਤਪਸ਼ ਬੁਝ 
 
 انّترِ سبدِ مِلیِ سہجے تپتِ بُجھائیِ رام  
انتر۔ دلمیں ۔ذہن میں۔ سہجے ۔ روحانیس کون ۔
 
وہ روحانی طور پر سبق مرشد کی بر کت سے خدا میں محو ومجذوب ہوجاتا ہے اور قدرتی طو پر دل کی تپش بجھ جاتی ہے ۔ 
 

 ਸਬਦਿ ਤਪਤਿ ਬੁਝਾਈ ਅੰਤਰਿ ਸਾਂਤਿ ਆਈ ਸਹਜੇ ਹਰਿ ਰਸੁ ਚਾਖਿਆ ॥
 
sabad tapat bujhaa-ee antar saaNt aa-ee sehjay har ras chaakhi-aa.
 
yes the Guru’s word quenched the fire of separation, tranquility prevailed within and she relished the elixir of God's Naam with intuitive ease.
 
ਗੁਰਸ਼ਬਦ ਨਾਲ ਤਪਸ਼ ਬੁਝ ਗਈਅੰਦਰ ਠੰਢਚੈਨ ਵਰਤ ਗਈ ਹੈ ਅਤੇ ਉਸ ਨੇ ਸੁਖੈਨ ਹੀ ਹਰਿਨਾਮ ਦਾ ਸੁਆਦ ਚੱਖ ਲਿਆ 
 
 سبدِ تپتِ بُجھائیِ انّترِ ساںتِ آئیِ سہجے ہرِ رسُ چاکھِیا  
تپت۔ حسد۔ کینہ ۔
 
جس نے بدیوں اور بدکاریوں بھرے دل کی تپش بجھالی سکون پالیا اس نے الہٰی نام سچ اور حقیقت کا لطف اُٹھالیا ۔
 

 ਮਿਲਿ ਪ੍ਰੀਤਮ ਅਪਣੇ ਸਦਾ ਰੰਗੁ ਮਾਣੇ ਸਚੈ ਸਬਦਿ ਸੁਭਾਖਿਆ ॥
 
mil pareetam apnay sadaa rang maanay sachai sabad subhaakhi-aa.
 
Meeting her Beloved-God, she enjoys His love continually; attuned to the divine words, her language becomes sublime and sweet.
 
 ਆਪਣੇ ਪ੍ਰਭੂ ਪ੍ਰੀਤਮ ਨੂੰ ਮਿਲ ਕੇ ਉਹ ਸਦਾ ਪ੍ਰੇਮਰੰਗ ਮਾਣਦੀ ਹੈਸੱਚੇ ਸ਼ਬਦ ਦੁਆਰਾ ਉਸ ਦੀ ਬੋਲੀ ਮਿੱਠੀ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ 
 
 مِلِ پ٘ریِتم اپنھے سدا رنّگُ مانھے سچےَ سبدِ سُبھاکھِیا  
سبھکھیا۔ نیک یا اچھا بیان۔
 
اپنے پیارے کے ملاپ سے پریم پاکر پریمی ہوگیا ۔ الہٰی حمدوثناہ والے کالم کی برکت سے اسکا کلام بھی پیار بھرا میٹھا ہوجاتا ہے
 

 ਪੜਿ ਪੜਿ ਪੰਡਿਤ ਮੋਨੀ ਥਾਕੇ ਭੇਖੀ ਮੁਕਤਿ ਨ ਪਾਈ ॥
 
parh parh pandit monee thaakay bhaykhee mukat na paa-ee.
 
By continually reading scriptures, the Pandits and the silent sages have grown weary; none has ever achieved liberation from Maya by wearing holy garbs.
  
ਧਾਰਮਿਕ ਪੁਸਤਕ ਪੜ੍ਹ ਪੜ੍ਹ ਕੇ ਪੰਡਿਤ,ਮੋਨਧਾਰੀ ਹੰਭ ਗਏ, ਭੇਖ ਧਾਰ ਧਾਰ ਕੇ ਕਿਸੇ ਨੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਬੰਧਨਾਂ ਤੋਂ ਖ਼ਲਾਸੀ ਪ੍ਰਾਪਤ ਨਾਹ ਕੀਤੀ
 
 پڑِ پڑِ پنّڈِت مونیِ تھاکے بھیکھیِ مُکتِ ن پائیِ  
مونی ۔ خاموش رہنےو الے ۔ بھیکھی ۔ بھیس والے ۔ مکت ۔ نجات۔ بورانا ۔ دیوناہ (3)
 
ورنہ عالم فاضل مذہبی کتابیں اور گئی طرح کے بھیس بنابنا کر ماند پڑ گئے کسی کو ان طرز عمل سے دنیاوی مالیاتی بندھنوں سے ناجت حاصل نہں ہوئی
 

 ਨਾਨਕ ਬਿਨੁ ਭਗਤੀ ਜਗੁ ਬਉਰਾਨਾ ਸਚੈ ਸਬਦਿ ਮਿਲਾਈ ॥੩॥
 
 naanak bin bhagtee jag ba-uraanaa sachai sabad milaa-ee. ||3||
 O’ Nanak, without devotional worship of God, the entire world has gone insane; union with God is attained only through the Guru’s divine word. ||3||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਭਗਤੀ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਜਗਤ ਝੱਲਾ ਹੋਇਆ ਹੋਇਆ ਹੈਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਵਾਲੇ ਗੁਰਸ਼ਬਦ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਮਿਲਾਪ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲੈਂਦਾ ਹੈ 
 
 نانک بِنُ بھگتیِ جگُ بئُرانا سچےَ سبدِ مِلائیِ  
اے ناک۔ یہ دنیاو الہٰی خوف اور عیش کے بغیر یہ دیوانگی کے علام میں ہیں۔ سچے کلام سے ہی ۔ ملاپ ہو سکتا ہے ۔ (3)
 

 ਸਾ ਧਨ ਮਨਿ ਅਨਦੁ ਭਇਆ ਹਰਿ ਜੀਉ ਮੇਲਿ ਪਿਆਰੇ ਰਾਮ ॥
 
 saa Dhan man anad bha-i-aa har jee-o mayl pi-aaray raam.
 Bliss permeates the mind of the soul-bride, whom God has united with Him,
 
ਜਿਸ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਨੂੰ ਪਿਆਰੇ ਹਰਿਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪਣੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੋੜ ਲਿਆ ਉਸ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਖਿੜਾਉ ਪੈਦਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
 
 سا دھن منِ اندُ بھئِیا ہرِ جیِءُ میلِ پِیارے رام  
سادھن ۔ وہ عورت ۔ مراد انسان ۔
 
اس انسان کو دلی سکون میسئر ہوا ( جس کے ) جس کو الہٰی ملاپ ہوا ۔
 

 ਸਾ ਧਨ ਹਰਿ ਕੈ ਰਸਿ ਰਸੀ ਗੁਰ ਕੈ ਸਬਦਿ ਅਪਾਰੇ ਰਾਮ ॥
 
saa Dhan har kai ras rasee gur kai sabad apaaray raam.
 
that soul-bride, through the Guru’s word, remains imbued with the elixir of the infinite God’s Name.
 
ਉਹ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਅਪਾਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਵਾਲੇ ਗੁਰਸ਼ਬਦ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਪ੍ਰੇਮਰਸ ਵਿਚ ਭਿੱਜੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ
 
 سا دھن ہرِ کےَ رسِ رسیِ گُر کےَ سبدِ اپارے رام  
ہر کے رس رسی ۔ الہٰی لطف کے مزے میں مجذوب ہوگئی ۔ سارے بسائے ۔
 
دل کھلا رہتا ہے ۔ وہ انسان اس لا محدود خدا کی حمدوثناہ سے کلام مرشد و سبق مرشد سسے الہٰی لطف و مزے میں محو ومجذوب رہتا ہے ۔ 
 

 ਸਬਦਿ ਅਪਾਰੇ ਮਿਲੇ ਪਿਆਰੇ ਸਦਾ ਗੁਣ ਸਾਰੇ ਮਨਿ ਵਸੇ ॥
 
sabad apaaray milay pi-aaray sadaa gun saaray man vasay.
 
She meets her beloved through the divine word of praises of the infinite God; she remembers and always enshrines His virtues in her heart.
 
ਅਪਾਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਵਾਲੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਉਹ ਪਿਆਰੇ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪੈਂਦੀ ਹੈਸਦਾ ਉਸ ਦੇ ਗੁਣ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਸਾਂਭਦੀ ਹੈ,
 
 سبدِ اپارے مِلے پِیارے سدا گُنھ سارے منِ ۄسے  
اور اس طرح سے الہٰی ملاپ میسر ہوجاتا ہے ۔ اور ہمیشہ اسکے اوصاف دلمیں بساتا ہے ۔ اسکا دل الہٰی اوصاف بسا لیتا ہے اور ( جسکا ) 

 

 ਸੇਜ ਸੁਹਾਵੀ ਜਾ ਪਿਰਿ ਰਾਵੀ ਮਿਲਿ ਪ੍ਰੀਤਮ ਅਵਗਣ ਨਸੇ ॥
 
sayj suhaavee jaa pir raavee mil pareetam avgan nasay.
 Her heart, in which she enjoys her husband-God, becomes beautiful; upon meeting the Beloved-God, all her vices disappear.
 
ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣ ਉਸ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਟਿਕੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੇ ਉਸ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੋੜ ਲਿਆ ਉਸ (ਦੇ ਹਿਰਦੇਦੀ ਸੇਜ ਸੋਹਣੀ ਬਣ ਗਈ ਪ੍ਰੀਤਮਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਮਿਲ ਕੇ ਉਸ ਦੇ ਅੰਦਰੋਂ ਸਾਰੇ ਔਗੁਣ ਦੂਰ ਹੋ ਗਏ
 
 سیج سُہاۄیِ جا پِرِ راۄیِ مِلِ پ٘ریِتم اۄگنھ نسے  
سیج ۔ انسانی دل ۔ سہاوی ۔ سوہنی ۔ پر ۔ خاوند۔ خدا۔
 
جس کے دلمیں الہٰی نام سچ حقیقت بس جاتا ہے ۔ 
 

 ਜਿਤੁ ਘਰਿ ਨਾਮੁ ਹਰਿ ਸਦਾ ਧਿਆਈਐ ਸੋਹਿਲੜਾ ਜੁਗ ਚਾਰੇ ॥
 
jit ghar naam har sadaa Dhi-aa-ee-ai sohilrhaa jug chaaray.
 
The heart in which there is always meditation on God’s Name, song of God’s praises continually resonate in that heart.
 
 ਜਿਸ ਹਿਰਦੇਘਰ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਦਾ ਸਿਮਰਿਆ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਉਥੇ ਸਦਾ ਹੀ (ਮਾਨੋਖ਼ੁਸ਼ੀ ਦਾ ਗੀਤ ਹੁੰਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 
 جِتُ گھرِ نامُ ہرِ سدا دھِیائیِئےَ سوہِلڑا جُگ چارے  
جت گھر ۔ جس دلمیں۔ سوہلڑا۔ خوشی کا نغمہ ۔ جگ چارے ۔ ہمشہ صدیوی ۔
 
اسکا دل ہمیشہ خوشی سے مسرور ہوکر خوشی کے گیت گاتے ہیں 
 

 ਨਾਨਕ ਨਾਮਿ ਰਤੇ ਸਦਾ ਅਨਦੁ ਹੈ ਹਰਿ ਮਿਲਿਆ ਕਾਰਜ ਸਾਰੇ ॥੪॥੧॥੬॥
 
naanak naam ratay sadaa anad hai har mili-aa kaaraj saaray. ||4||1||6||
 
O’ Nanak, those who are imbued with the love of God’s Name are always in bliss, and upon meeting God, all their tasks are successfully accomplished. ||4||1||6||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਜੇਹੜੇ ਜੀਵ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮਰੰਗ ਵਿਚ ਰੰਗੇ ਜਾਂਦੇ ਹਨ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਅੰਦਰ ਸਦਾ ਆਨੰਦ ਬਣਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਮਿਲ ਕੇ ਉਹ ਆਪਣੇ ਸਾਰੇ ਕੰਮ ਸੰਵਾਰ ਲੈਂਦੇ ਹਨ 
 
 نانک نامِ رتے سدا اندُ ہےَ ہرِ مِلِیا کارج سارے  
کارج سارے ۔ کاموں میں کامیابی ۔
 
اے نانک ۔ جو انسان الہٰی نام کے پریمی ہوجاتے ہیں انکے دلمیں ہمیشہ سکون بنا رہتا ہے اور الہٰی ملاپ سے تمام کام سنور جاتے ہیں۔
 

 ੴ ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ॥
 
ik-oNkaar satgur parsaad.
 
One eternal God, realized by the grace of the true Guru:
 
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 
  ستِگُر پ٘رسادِ  
ایک لازوال خدا ، سچے گرو کے فضل سے سمجھا گیا

 

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੩ ਛੰਤ ਘਰੁ ੩ ॥
 
aasaa mehlaa 3 chhant ghar 3.
 
Raag Aasaa, Third Guru: Chhant, Third Beat: 
 
 آسا مہلا  چھنّت گھرُ   
 
 ਸਾਜਨ ਮੇਰੇ ਪ੍ਰੀਤਮਹੁ ਤੁਮ ਸਹ ਕੀ ਭਗਤਿ ਕਰੇਹੋ ॥
 
saajan mayray pareetmahu tum sah kee bhagat karayho.
 O’ my dear friends, keep meditating on Husband-God with loving devotion.
 
ਹੇ ਮੇਰੇ (ਸਤਸੰਗੀਸੱਜਣੋ ਪਿਆਰਿਓਤੁਸੀ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੀ ਭਗਤੀ ਸਦਾ ਕਰਦੇ ਰਿਹਾ ਕਰੋ,
 
 ساجن میرے پ٘ریِتمہُ تُم سہ کیِ بھگتِ کریہو  
ساجن۔ دوست۔ پریتمہو ۔ پیار یؤ۔ سیہہ کی ۔ خاوند ۔ خدا کی ۔ کریہو۔ کرؤ۔
 
اے میرے پیارے دوستوں خدا کی عبادت کرؤ ۔ 
 

 ਗੁਰੁ ਸੇਵਹੁ ਸਦਾ ਆਪਣਾ ਨਾਮੁ ਪਦਾਰਥੁ ਲੇਹੋ ॥
 
gur sayvhu sadaa aapnaa naam padaarath layho.
 
Always keep serving your Guru by following his teachings and receive from him the wealth of Naam
 
ਸਦਾ ਆਪਣੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪਏ ਰਹੋ (ਤੇ ਗੁਰੂ ਪਾਸੋਂਸਭ ਤੋਂ ਕੀਮਤੀ ਚੀਜ਼ ਹਰਿਨਾਮ ਹਾਸਲ ਕਰੋ
 
 گُرُ سیۄہُ سدا آپنھا نامُ پدارتھُ لیہو  
پدارتھ ۔ نعمت۔ گر سیوہو ۔ خدمت مرشد کیجیئے ۔
 
ہمیشہ خدمت مرشد سے نام کی نعمت حاصل کرؤ۔ 
 

 ਭਗਤਿ ਕਰਹੁ ਤੁਮ ਸਹੈ ਕੇਰੀ ਜੋ ਸਹ ਪਿਆਰੇ ਭਾਵਏ ॥
 
bhagat karahu tum sahai kayree jo sah pi-aaray bhaav-ay.
 Yes, perform the worship of the Husband-God, which is pleasing to Him.
 
ਤੁਸੀ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੀ ਹੀ ਭਗਤੀ ਕਰਦੇ ਰਹੋਇਹ ਭਗਤੀ ਪਿਆਰੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਪਸੰਦ ਆਉਂਦੀ ਹੈ
 
 بھگتِ کرہُ تُم سہےَ کیریِ جو سہ پِیارے بھاۄۓ  
بھاوئے ۔ چاہتا ہے ۔ ھانا۔ ( رضا) مرضی )
 
خدا کی عبادت وریاضت کرتے رہو۔ جوپیارے خڈا کو پسند ہے ۔ 
 

 ਆਪਣਾ ਭਾਣਾ ਤੁਮ ਕਰਹੁ ਤਾ ਫਿਰਿ ਸਹ ਖੁਸੀ ਨ ਆਵਏ ॥
 
aapnaa bhaanaa tum karahu taa fir sah khusee na aav-ay.
 
But if you do only what pleases you, then you would not receive the pleasure or gracre of the Husband-God.
 
ਜੇ ਤੁਸੀ ਆਪਣੀ ਹੀ ਮਰਜ਼ੀ ਕਰਦੇ ਰਹੋਗੇ ਤਾਂ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੀ ਪ੍ਰਸੰਨਤਾ ਤੁਹਾਨੂੰ ਨਹੀਂ ਮਿਲੇਗੀ
 
 آپنھا بھانھا تُم کرہُ تا پھِرِ سہ کھُسیِ ن آۄۓ  
سیہہ خوشی خاوند کی خوشنودی ۔
 
اگر اپنی مرضی کرتے رہو گے تو الہٰی خوشنودی حاصل نہ ہوگی ۔ 
 

 ਭਗਤਿ ਭਾਵ ਇਹੁ ਮਾਰਗੁ ਬਿਖੜਾ ਗੁਰ ਦੁਆਰੈ ਕੋ ਪਾਵਏ ॥
 
bhagat bhaav ih maarag bikhrhaa gur du-aarai ko paav-ay.
 
This path of loving devotional worship is very difficult and only a rare person adopts this way of life through the Guru’s teachings.
 
ਭਗਤੀ ਦਾ ਤੇ ਪ੍ਰੇਮ ਦਾ ਇਹ ਰਸਤਾ ਬਹੁਤ ਔਕੜਾਂਭਰਿਆ ਹੈਕੋਈ ਵਿਰਲਾ ਮਨੁੱਖ ਇਹ ਰਸਤਾ ਲੱਭਦਾ ਹੈ ਜੋ ਗੁਰੂ ਦੇ ਦਰ ਤੇ  ਡਿੱਗਦਾ ਹੈ
 
 بھگتِ بھاۄ اِہُ مارگُ بِکھڑا گُر دُیارےَ کو پاۄۓ  
بھگت بھاو۔ الہٰی خوف و پیار کا مدعا یا راستہ ۔ مارگ و کھر ۔ دشوار گذار راستہ ۔ گور دوارے کو پاوے ۔ مرشد کے وسیلے سے کسی کو ملتا ہے ۔
 
الہٰی خوف ورضا کا راستہ نہایت دشوار گذار ہے کوئی ہی اس راستے کا رہگزر ہوتا ہے جو مرشد کے سیلے سے حاصل ہوتا ہے ۔ 
 

 ਕਹੈ ਨਾਨਕੁ ਜਿਸੁ ਕਰੇ ਕਿਰਪਾ ਸੋ ਹਰਿ ਭਗਤੀ ਚਿਤੁ ਲਾਵਏ ॥੧॥
 
kahai naanak jis karay kirpaa so har bhagtee chit laav-ay. ||1||
 
Nanak says, the one on whom God shows mercy, only that one attunes his mind to the devotional worship of God.||1||
 
ਨਾਨਕ ਆਖਦਾ ਹੈਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਉਤੇ ਪ੍ਰਭੂ (ਆਪਕਿਰਪਾ ਕਰਦਾ ਹੈ ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਆਪਣਾ ਮਨ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਭਗਤੀ ਵਿਚ ਜੋੜਦਾ ਹੈ 
 
 کہےَ نانکُ جِسُ کرے کِرپا سو ہرِ بھگتیِ چِتُ لاۄۓ  
سو۔ اسے ۔ چت لاوئے ۔ دل لگاتا ہے ۔
 
نانک کا فرمان ہے ۔ جس انسان پر الہٰی کرم و عنایت ہے وہی اس الہٰی خوف و محبت (بھگتی ) کا راستہ اختیار کرتا ہے
 

 ਮੇਰੇ ਮਨ ਬੈਰਾਗੀਆ ਤੂੰ ਬੈਰਾਗੁ ਕਰਿ ਕਿਸੁ ਦਿਖਾਵਹਿ ॥
 
 mayray man bairaagee-aa tooN bairaag kar kis dikhaaveh.
 O’ my falsely detached mind, to whom are you showing your detachedness?
 
ਹੇ ਵੈਰਾਗ ਵਿਚ ਆਏ ਹੋਏ ਮੇਰੇ ਮਨਤੂੰ ਵੈਰਾਗ ਕਰ ਕੇ ਕਿਸ ਨੂੰ ਵਿਖਾਂਦਾ ਹੈਂ? 
 
 میرے من بیَراگیِیا توُنّ بیَراگُ کرِ کِسُ دِکھاۄہِ  
دیراگیا ۔ طارق الدنیا۔
 
اے طارق ہو رہے دل تو طارق ہوکر کسے دکھاوا کر رہا ہے 
 

 ਹਰਿ ਸੋਹਿਲਾ ਤਿਨ੍ਹ੍ਹ ਸਦ ਸਦਾ ਜੋ ਹਰਿ ਗੁਣ ਗਾਵਹਿ ॥
 
har sohilaa tinH sad sadaa jo har gun gaavahi.
 
Those who always sing God’s praises, a song of God’s praises continually plays within them.
 
ਜੇਹੜੇ ਮਨੁੱਖ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਗੁਣ ਗਾਂਦੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨਉਹਨਾਂ ਦੇ ਅੰਦਰ ਸਦਾ ਹੀ ਖਿੜਾਉ ਤੇ ਚਾਉ ਬਣਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 
 ہرِ سوہِلا تِن٘ہ٘ہ سد سدا جو ہرِ گُنھ گاۄہِ  
سوہلا۔ خوشی کا نغمہ
 
جو الہٰی حمدوثناہ کرتا ہے ان کے دلمیں ہمیشہ خوشنودی بنی رہتی ہے ۔
 

 ਕਰਿ ਬੈਰਾਗੁ ਤੂੰ ਛੋਡਿ ਪਾਖੰਡੁ ਸੋ ਸਹੁ ਸਭੁ ਕਿਛੁ ਜਾਣਏ ॥
 
kar bairaag tooN chhod pakhand so saho sabh kichh jaan-ay.
 Renounce hypocrisy and inculcate love for God, because He knows everything.
 
 ਹੇ ਮੇਰੇ ਮਨਪਖੰਡ ਛੱਡ ਦੇਤੇ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰ ਮਿਲਣ ਦੀ ਤਾਂਘ ਪੈਦਾ ਕਰ ਕਿਉਂਕਿ ਉਹ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਹਰੇਕ ਗੱਲ ਜਾਣਦਾ ਹੈ,
 
 کرِ بیَراگُ توُنّ چھوڈِ پاکھنّڈُ سو سہُ سبھُ کِچھُ جانھۓ  
سیہہ ۔ سوآمی ۔ خدا۔
 
اے انسان دکھاوا چھوڑ کر طارق ہو جا کیونکہ خدا سب کچھ جانتا ہے 
 

 ਜਲਿ ਥਲਿ ਮਹੀਅਲਿ ਏਕੋ ਸੋਈ ਗੁਰਮੁਖਿ ਹੁਕਮੁ ਪਛਾਣਏ ॥
 
jal thal mahee-al ayko so-ee gurmukh hukam pachhaan-ay.
 
The one God is pervading in all waters, lands, and the sky and the Guru’s follower understands God’s command.
 
ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਜਲ ਵਿਚ ਧਰਤੀ ਵਿਚ ਆਕਾਸ਼ ਵਿਚ ਸਮਾਇਆ ਹੋਇਆ ਹੈਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਨੂੰ ਸਮਝਦਾ ਹੈ
 
 جلِ تھلِ مہیِئلِ ایکو سوئیِ گُرمُکھِ ہُکمُ پچھانھۓ  
جل ۔ تھل ۔مہئل۔ سمندر۔ زمین وآسمان۔ گورمکھ ۔ مرشد کےوسیلے سے ۔
 
خدا ہر جگہ سمائیا ہوا ہے ۔ مرید مرشد ہوکر الہٰی رضا کی سمجھ آتی ہے ۔
 

 ਜਿਨਿ ਹੁਕਮੁ ਪਛਾਤਾ ਹਰੀ ਕੇਰਾ ਸੋਈ ਸਰਬ ਸੁਖ ਪਾਵਏ ॥
 
jin hukam pachhaataa haree kayraa so-ee sarab sukh paav-ay.
 
One who recognizes God's command, receives all peace and comforts.
 
ਜੋ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਨੂੰ ਪਛਾਣਦਾ ਹੈ, ਉਹੀ ਸਾਰੇ ਆਨੰਦ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰਦਾ ਹੈ,
 
 جِنِ ہُکمُ پچھاتا ہریِ کیرا سوئیِ سرب سُکھ پاۄۓ  
سرب۔ سارے ۔
 
جس انسان کو الہٰی رضا کی سمجھ آگئی اسے ہر قسم کے آرام و آسائش حاصل ہوگئے ۔ 
 

 ਇਵ ਕਹੈ ਨਾਨਕੁ ਸੋ ਬੈਰਾਗੀ ਅਨਦਿਨੁ ਹਰਿ ਲਿਵ ਲਾਵਏ ॥੨॥
 
iv kahai naanak so bairaagee an-din har liv laav-ay. ||2|| 
This is what Nanak says, that person is truly detached from worldly desires who always keeps attuned to God. ||2||
 
ਨਾਨਕ (ਤੈਨੂੰਇਉਂ ਦੱਸਦਾ ਹੈ ਕਿ ਅਸਲ ਵੈਰਾਗੀ ਉਹ ਹੈ ਜੋ ਹਰ ਰੋਜ਼ ਹਰੀ ਨਾਲ ਪ੍ਰੇਮ ਲਾਉਂਦਾ ਹੈ 
 
 اِۄ کہےَ نانکُ سو بیَراگیِ اندِنُ ہرِ لِۄ لاۄۓ  
او۔ ایسے (2)
 
نانک کا فرمان اسطرح ہے ۔ کر اس طرح کا طارق ہر روز خدا میں محو و مجذوب رہتا ہے (2)
 

 ਜਹ ਜਹ ਮਨ ਤੂੰ ਧਾਵਦਾ ਤਹ ਤਹ ਹਰਿ ਤੇਰੈ ਨਾਲੇ ॥
 
jah jah man tooN Dhaavdaa tah tah har tayrai naalay.
 
O’ my mind, wherever you go, God always remains with you.
 
ਹੇ ਮੇਰੇ ਮਨਜਿੱਥੇ ਜਿੱਥੇ ਤੂੰ ਦੌੜਦਾ ਫਿਰਦਾ ਹੈਂ ਉਥੇ ਉਥੇ ਹੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਤੇਰੇ ਨਾਲ ਹੀ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ,
 
 جہ جہ من توُنّ دھاۄدا تہ تہ ہرِ تیرےَ نالے  
دھاودا۔ دوڑتا۔ بھٹکتا ۔
 
اے دل تو جہاں کہیں دوڑتا پھرتا ہے خدا تیرے ساتھ ہوتا ہے وہیں۔ 
 

 ਮਨ ਸਿਆਣਪ ਛੋਡੀਐ ਗੁਰ ਕਾ ਸਬਦੁ ਸਮਾਲੇ ॥
 
 man si-aanap chhodee-ai gur kaa sabad samaalay.
 O’ my mind, renounce your cleverness and reflect upon the Guru's word.
  
ਹੇ ਮਨਆਪਣੀ ਚਤੁਰਾਈ (ਦਾ ਆਸਰਾਛੱਡ ਦੇ ਤੇਹੇ ਮਨਗੁਰੂ ਦਾ ਸ਼ਬਦ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰ ਸੰਭਾਲ ਕੇ ਰੱਖ!
 
 من سِیانھپ چھوڈیِئےَ گُر کا سبدُ سمالے  
سیانپ ۔ دانشمندی ۔ سبد۔ کلام۔ سمالے ۔ دلمیں بسا۔
 
اے دل دانشمندی ارو چالا کی چھوڑ کر کلام مرشد کو اپنا دل میں بسا
 

 ਸਾਥਿ ਤੇਰੈ ਸੋ ਸਹੁ ਸਦਾ ਹੈ ਇਕੁ ਖਿਨੁ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਸਮਾਲਹੇ ॥
 
saath tayrai so saho sadaa hai ik khin har naam samaal
 If just for a moment you meditate on God’s Name with loving devotion, you would realize that Husband-God is always with you.
 
 ਉਹ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਸਦਾ ਤੇਰੇ ਨਾਲ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ (ਹੇ ਮਨ!) ਜੇ ਤੂੰ ਇਕ ਖਿਨ ਵਾਸਤੇ ਭੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰ ਵਸਾਏਂ,
 
 ساتھِ تیرےَ سو سہُ سدا ہےَ اِکُ کھِنُ ہرِ نامُ سمالہے  
سہو ۔ خدا۔ خاوند۔ آقا۔ کھن۔ ذرا سے وقفے کے لئے ۔
 
اور اس پر عمل کر خدا ہمیشہ تیرے ساتھ ہے اگر بھتو تھوڑے سے وقفے کےلئے بھی الہٰی نام سچ و حقیقت دل یں بسائے تو 
 

 ਜਨਮ ਜਨਮ ਕੇ ਤੇਰੇ ਪਾਪ ਕਟੇ ਅੰਤਿ ਪਰਮ ਪਦੁ ਪਾਵਹੇ ॥
 
janam janam kay tayray paap katay ant param pad paavhay.
 
The sins of your myriad births will be washed off and in the end you will attain the supreme spiritual status.
 
ਤੇਰੇ ਅਨੇਕਾਂ ਜਨਮਾਂ ਦੇ ਪਾਪ ਕੱਟੇ ਜਾਣਤੇਆਖ਼ਰ ਤੂੰ ਸਭ ਤੋਂ ਉੱਚਾ ਆਤਮਕ ਦਰਜਾ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲਵੇਗਾ 
 
 جنم جنم کے تیرے پاپ کٹے انّتِ پرم پدُ پاۄہے  
پاپ ۔ گناہ ۔ گٹے ۔ عافو۔ جنم جنم ۔ دیرینہ ۔ انت۔ آخر۔ پرم پدوی ۔ بلند رتبہ ۔
 
تیرے دیرینہ کئے ہوئے گناہ عافو ہو جائینگے ۔ اور روحانی بلند رتبہ حاسل کر لیگا ۔
 

 ਸਾਚੇ ਨਾਲਿ ਤੇਰਾ ਗੰਢੁ ਲਾਗੈ ਗੁਰਮੁਖਿ ਸਦਾ ਸਮਾਲੇ ॥
 
saachay naal tayraa gandh laagai gurmukh sadaa samaalay.
 
You will form a close bondage with the eternal God by always remembering Him through the Guru’s teachings.
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਤੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਦਾ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰ ਵਸਾਈ ਰੱਖਉਸ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਤੇਰਾ ਪੱਕਾ ਪਿਆਰ ਬਣ ਜਾਏਗਾ
 
 ساچے نالِ تیرا گنّڈھُ لاگےَ گُرمُکھِ سدا سمالے  
گھنڈھ ۔ رشتہ ۔ واسطہ ۔ تعلق۔
 
اس لئے مرید مرشد ہوکر خدا کو دلمیں بسا۔ اس طرح خدا کے ساتھ مستقبل طور پر پریم پیار ہوجائیگا
 

 ਇਉ ਕਹੈ ਨਾਨਕੁ ਜਹ ਮਨ ਤੂੰ ਧਾਵਦਾ ਤਹ ਹਰਿ ਤੇਰੈ ਸਦਾ ਨਾਲੇ ॥੩॥
 
i-o kahai naanak jah man tooN Dhaavdaa tah har tayrai sadaa naalay. ||3||
 
Nanak says, O’ my mind wherever you go, God is always there with you. ||3||
 
ਨਾਨਕ ਤੈਨੂੰ ਇਉਂ ਦੱਸਦਾ ਹੈ ਕਿ ਹੇ ਮਨਜਿੱਥੇ ਜਿੱਥੇ ਤੂੰ ਭਟਕਦਾ ਫਿਰਦਾ ਹੈਂ ਉੱਥੇ ਉੱਥੇ ਪ੍ਰਭੂ ਸਦਾ ਤੇਰੇ ਨਾਲ ਹੀ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ 
 
 اِءُ کہےَ نانکُ جہ من توُنّ دھاۄدا تہ ہرِ تیرےَ سدا نالے  
اے انسان نانک اس طرح بیان کرتا ہے جہاں جاتا ہے خدا ساتھ ہوتا ہے (3)
 

 ਸਤਿਗੁਰ ਮਿਲਿਐ ਧਾਵਤੁ ਥੰਮ੍ਹ੍ਹਿਆ ਨਿਜ ਘਰਿ ਵਸਿਆ ਆਏ ॥
 
satgur mili-ai Dhaavat thamiH-aa nij ghar vasi-aa aa-ay.
Upon meeting the true Guru and following his teachings, the wandering mind is held steady and comes to dwell within.
 
ਜੇ ਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪਏ ਤਾਂ ਇਹ ਭਟਕਦਾ ਮਨ ਰੁਕ ਜਾਂਦਾ ਹੈਤੇ ਫਿਰ ਪ੍ਰਭੂ ਹੀ ਮਨ ਵਿੱਚ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 
 ستِگُر مِلِئےَ دھاۄتُ تھنّم٘ہ٘ہِیا نِج گھرِ ۄسِیا آۓ  
دھاوت ۔ بھٹکتا ۔ تھمیا۔ رکا۔ نج گھر۔ اصل ٹھکانے ۔
 
سچے مرشد کے ملاپ سے دوڑاتا بھٹکتا دل رک جاتا ہے اور اپنے اصل ٹھکانے آجاتا ہے ۔ 
 

 ਨਾਮੁ ਵਿਹਾਝੇ ਨਾਮੁ ਲਏ ਨਾਮਿ ਰਹੇ ਸਮਾਏ ॥
 
naam vihaajhay naam la-ay naam rahay samaa-ay.
 
Then it receives Naam, meditates on Naam and remains absorbed in Naam.
 
(ਫਿਰ ਇਹਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਸੌਦਾ ਕਰਦਾ ਹੈ (ਭਾਵ,) ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਜਪਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈਨਾਮ ਵਿਚ ਲੀਨ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 
 نامُ ۄِہاجھے نامُ لۓ نامِ رہے سماۓ  
نام وہاجے ۔ نام یعنی سچ اور حقیقت خریدنے ۔ نام لئے ۔ نام یعنی سچ اور حقیقت پیش یا ساہمنے رکھے ۔ نام رہے سمائے ۔ نام کو دلمیں بسائے ۔ حکم۔ فرمان ۔ رضا۔
 
نام یعنی سچ اور حقیقت خریدے نام دل میں بسائے اور سچ اور حقیقت میں محو ومجذوب رہے ۔