Urdu-Page-431

ਆਸਾਵਰੀ ਮਹਲਾ ੫ ਘਰੁ ੩
 
aasaavaree mehlaa 5 ghar 3
 
Raag Aasaavaree, Fifth Guru:Third beat.
 
 آساۄریِ مہلا  گھرُ 
 
 ੴ ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ॥
 
ik-oNkaar satgur parsaad.
 
One eternal God, realized by the grace of the true Guru:
  
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 
 ستِگُر پ٘رسادِ 
 
ایک لازوال خدا ، سچے گرو کے فضل سے سمجھا گیا
 

 ਮੇਰੇ ਮਨ ਹਰਿ ਸਿਉ ਲਾਗੀ ਪ੍ਰੀਤਿ ॥
 
mayray man har si-o laagee pareet.
 
O’ my mind, the person who is imbued with the love of God,
  
ਹੇ ਮੇਰੇ ਮਨਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੀ ਪ੍ਰੀਤ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨਾਲ ਬਣ ਜਾਂਦੀ ਹੈ,
 
 میرے من ہرِ سِءُ لاگیِ پ٘ریِتِ 
 
پریت۔ پریم۔پیار ۔
 
اے میرے دماغ ، وہ شخص جو خدا کی محبت میں رنگا ہوا ہے
 

 ਸਾਧਸੰਗਿ ਹਰਿ ਹਰਿ ਜਪਤ ਨਿਰਮਲ ਸਾਚੀ ਰੀਤਿ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
 
saaDhsang har har japat nirmal saachee reet. ||1|| rahaa-o.
 
meditating on God’s Name in the company of the saintly persons becomes his true and immaculate way of life. ||1||Pause||
  
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਜਪਦਿਆਂ ਉਸ ਦੀ ਇਹੋ ਰੋਜ਼ਾਨਾ ਪਵਿਤ੍ਰ ਕਾਰ ਬਣ ਜਾਂਦੀ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 
 سادھسنّگِ ہرِ ہرِ جپت نِرمل ساچیِ ریِتِ  رہاءُ 
 
سادھ سنگ۔ پاکدامن کی صحبت و قربت نرمل۔ پاک ساچی ۔ ریت ۔ سچی رسم ورواج ۔
 
سنت لوگوں کی صحبت میں خدا کے نام پر غور کرنا اس کا صحیح اور بے راہ روی زندگی بن جاتا ہے 
 

 ਦਰਸਨ ਕੀ ਪਿਆਸ ਘਣੀ ਚਿਤਵਤ ਅਨਿਕ ਪ੍ਰਕਾਰ ॥
 
darsan kee pi-aas ghanee chitvat anik parkaar.
O’ God, by thinking about Your many kinds of virtues, an immense desire for Your blessed vision has arisen in me.
  
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਤੇਰੇ ਅਨੇਕਾਂ ਕਿਸਮਾਂ ਦੇ ਗੁਣਾਂ ਨੂੰ ਯਾਦ ਕਰਦਿਆਂ (ਮੇਰੇ ਅੰਦਰਤੇਰੇ ਦਰਸਨ ਦੀ ਤਾਂਘ ਬਹੁਤ ਬਣ ਗਈ ਹੈ,
 
 درسن کیِ پِیاس گھنھیِ چِتۄت انِک پ٘رکار 
 
گھنی ۔ زیادہ۔ چتو ت ۔ یاد کرنا۔ انک پرکار۔ کئی طریقوں سے 
 
اے خدا ، آپ کی بہت سی خوبیوں کے بارے میں سوچ کر ، مجھ میں آپ کی بصیرت نگاہ کی بے پناہ خواہش پیدا ہوگئی
 

 ਕਰਹੁ ਅਨੁਗ੍ਰਹੁ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਹਰਿ ਕਿਰਪਾ ਧਾਰਿ ਮੁਰਾਰਿ ॥੧॥
 
karahu anoograhu paarbarahm har kirpaa Dhaar muraar. ||1||
Therefore, O’ supreme God show mercy and bless me with Your vision. ||1||
  
ਹੇ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮਹੇ ਮੁਰਾਰੀਮੇਹਰ ਕਰਕਿਰਪਾ ਕਰ (ਦੀਦਾਰ ਬਖ਼ਸ਼
 
 کرہُ انُگ٘رہُ پارب٘رہم ہرِ کِرپا دھارِ مُرارِ 
 
انگریہہ۔ مہربانی ۔ پار برہم۔ پار لگانے ولاے ۔ خدا ۔ کر پادھار۔ کرم و عنایت فرما۔
 
۔ اے اپنی کرم و عنایت سے دیدار عنایت فرما
 

 ਮਨੁ ਪਰਦੇਸੀ ਆਇਆ ਮਿਲਿਓ ਸਾਧ ਕੈ ਸੰਗਿ ॥
 
man pardaysee aa-i-aa mili-o saaDh kai sang.
 
After wandering around in myriad of existences, when one comes and joins the company of the Guru.
  
ਅਨੇਕਾਂ ਜੂਨਾਂ ਵਿਚ ਭਟਕਦਾ ਜਦੋਂ ਕੋਈ ਮਨ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ  ਮਿਲਦਾ ਹੈ,
 
 منُ پردیسیِ آئِیا مِلِئو سادھ کےَ سنّگِ 
 
ملیؤ سادھ کے سنگ .پاکدامن کی صحبت سے ملتا ہے ۔
 
وجود کے ہزاروں گھومنے پھرنے کے بعد ، جب کوئی آتا ہے اور گرو کی صحبت میں شامل ہوتا ہے
 

 ਜਿਸੁ ਵਖਰ ਕਉ ਚਾਹਤਾ ਸੋ ਪਾਇਓ ਨਾਮਹਿ ਰੰਗਿ ॥੨॥
 
jis vakhar ka-o chaahtaa so paa-i-o naameh rang. ||2||
 
Then by imbuing itself with the love of God’s Name, one attains the wealth of Naam which it has been longing for so many births. ||2||
  
ਜਿਸ ਉੱਚੇ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਨੂੰ ਉਹ ਸਦਾ ਤਰਸਦਾ  ਰਿਹਾ ਸੀ ਉਹ ਉਸ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਦੇ ਪਿਆਰ ਵਿਚ ਜੁੜਿਆਂ ਮਿਲ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 
 جِسُ ۄکھر کءُ چاہتا سو پائِئو نامہِ رنّگِ 
 
نہچل۔ دائمی ۔ مستقل
 
جس سودے کی اس کے دل میں خواہش تھی اور اس الہٰی نام کی محبت سے حاصل ہو جاتا ہے ۔ 
 

 ਜੇਤੇ ਮਾਇਆ ਰੰਗ ਰਸ ਬਿਨਸਿ ਜਾਹਿ ਖਿਨ ਮਾਹਿ ॥
 
jaytay maa-i-aa rang ras binas jaahi khin maahi.
All the pleasures and relishes of Maya (worldly attachments), perish in an instant.
  
ਮਾਇਆ ਦੇ ਜਿਤਨੇ ਭੀ ਕੌਤਕ ਤੇ ਸੁਆਦਲੇ ਪਦਾਰਥ ਦਿੱਸ ਰਹੇ ਹਨ ਇਕ ਖਿਨ ਵਿਚ ਨਾਸ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨ,
 
 جیتے مائِیا رنّگ رس بِنسِ جاہِ کھِن ماہِ 
 
جس نے مایئیا کے مزے اور لطف ہیں پل بھر میں ختم ہو جاتے ہیں۔
 

 ਭਗਤ ਰਤੇ ਤੇਰੇ ਨਾਮ ਸਿਉ ਸੁਖੁ ਭੁੰਚਹਿ ਸਭ ਠਾਇ ॥੩॥
 
bhagat ratay tayray naam si-o sukhbhuNcheh sabhthaa-ay. ||3||
 
Devotees imbued with Your Name, enjoy peace everywhere. ||3||
  
ਤੇਰੇ ਭਗਤ ਤੇਰੇ ਨਾਮਰੰਗ ਵਿਚ ਰੰਗੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨਉਹ ਹਰ ਥਾਂ ਅਨੰਦ ਮਾਣਦੇ ਹਨ 
 
بھگت رتے تیرے نام سِءُ سُکھُ بھُنّچہِ سبھ ٹھاءِ 
 
خادمان خدا جو تیرے نام میں محو ومجذوب ہیں ہر جا آرام اور آسائش پاتے ہیں
 

 ਸਭੁ ਜਗੁ ਚਲਤਉ ਪੇਖੀਐ ਨਿਹਚਲੁ ਹਰਿ ਕੋ ਨਾਉ ॥
 
sabh jag chalta-o paykhee-ai nihchal har ko naa-o.
 
The entire world is seen to be passing away, only God's Name is eternal.
  
ਸਾਰਾ ਸੰਸਾਰ ਨਾਸਵੰਤ ਦਿੱਸ ਰਿਹਾ ਹੈਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਸਿਰਫ਼ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਹੀ ਹੈ
 
 سبھُ جگُ چلتءُ پیکھیِئےَ نِہچلُ ہرِ کو ناءُ 
 
سارا علم مٹتا دکھائی دیتا ہے ۔ صدیوی دائمی صرف الہٰی نام ہے
 

 ਕਰਿ ਮਿਤ੍ਰਾਈ ਸਾਧ ਸਿਉ ਨਿਹਚਲੁ ਪਾਵਹਿ ਠਾਉ ॥੪॥
 
kar mitraa-ee saaDh si-o nihchal paavahi thaa-o. ||4||
 
Make friends with the Guru, you would obtain a place of everlasting peace. ||4||
 
ਗੁਰੂ ਨਾਲ ਪਿਆਰ ਪਾ (ਉਸ ਪਾਸੋਂ ਇਹ ਹਰਿਨਾਮ ਮਿਲੇਗਾਤੇਤੂੰ ਉਹ ਟਿਕਾਣਾ ਲੱਭ ਲਏਂਗਾ ਜੇਹੜਾ ਕਦੀ ਭੀ ਨਾਸ ਹੋਣ ਵਾਲਾ ਨਹੀਂ 
 
 کرِ مِت٘رائیِ سادھ سِءُ نِہچلُ پاۄہِ ٹھاءُ 
 
پاکدامن ساتھ دوستی کرتا کہ تجھے مستقل مقام حاصل ہو ۔
 

 ਮੀਤ ਸਾਜਨ ਸੁਤ ਬੰਧਪਾ ਕੋਊ ਹੋਤ ਨ ਸਾਥ ॥
 
meet saajan sut banDhpaa ko-oo hot na saath.
Whether it be your friends, mates, sons or relatives, none of these can be your companion for ever.
  
ਮਿੱਤਰਸੱਜਣਪੁੱਤਰਰਿਸ਼ਤੇਦਾਰਕੋਈ ਭੀ ਸਦਾ ਦੇ ਸਾਥੀ ਨਹੀਂ ਬਣ ਸਕਦੇ
 
 میِت ساجن سُت بنّدھپا کوئوُ ہوت ن ساتھ 
 
میت ساجن۔ دوست۔ ست ۔ بیٹا۔ بندھپا۔ رشتے دار ۔ کوؤ ہوت نہ ساتھ۔ کوئی ساتھی نہ ہوگا۔
 
دوست۔ بیٹا رشتے دار کوئی ساتھ دینے والا نہیں

 
 
ਏਕੁ ਨਿਵਾਹੂ ਰਾਮ ਨਾਮ ਦੀਨਾ ਕਾ ਪ੍ਰਭੁ ਨਾਥ ॥੫॥
 
ayk nivaahoo raam naam deenaa kaa parabh naath. ||5||
 
God, the protector of the meek, is the everlasting companion. ||5||
  
ਸਦਾ ਸਾਥ ਨਿਬਾਹੁਣ ਵਾਲਾ ਸਿਰਫ਼ ਉਸ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਹੀ ਹੈ ਜੇਹੜਾ ਗਰੀਬਾਂ ਦਾ ਰਾਖਾ ਹੈ 
 
 ایکُ نِۄاہوُ رام نام دیِنا کا پ٘ربھُ ناتھ 
 
نواہو۔ نبھنے والا ۔ ساتھی دینے والا۔ رام نام۔ خدا کا نام دینا ۔ غریبوں کا ناتھ مالک
 
۔ صرف الہٰی نام ہی ساتھ دینے والا ہے ۔ جو غریبوں کا مالک (4)
 

 ਚਰਨ ਕਮਲ ਬੋਹਿਥ ਭਏ ਲਗਿ ਸਾਗਰੁ ਤਰਿਓ ਤੇਹ ॥
 
 charan kamal bohith bha-ay lag saagar tari-o tayh.
The person for whom the Guru’s lotus feet (words) have become like a ship; by following these words, that person has crossed the world ocean of vices
 
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਵਾਸਤੇ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸੋਹਣੇ ਕੋਮਲ ਚਰਨ ਜਹਾਜ਼ ਬਣ ਗਏ ਉਹ ਇਹਨਾਂ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੁੜ ਕੇ ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘ ਗਿਆ
 
 چرن کمل بوہِتھ بھۓ لگِ ساگرُ ترِئو تیہ 
 
(5) چرن کمل۔ کنول جیسے پاؤں ۔ بوہتھ۔ جہاز لگ کے ساتھ ۔ ساگر۔ تریؤ۔ اس عالم سے کامیاب ہو۔ ساگر یا سمندر کی اس عالم کو تشبیح دی ہے
 
خدائے پاک جو کنول جیسے ہیں پڑکو اس دنیاوی سمندر سے کامیاب ہو سکتے ہیں ۔
 

 ਭੇਟਿਓ ਪੂਰਾ ਸਤਿਗੁਰੂ ਸਾਚਾ ਪ੍ਰਭ ਸਿਉ ਨੇਹ ॥੬॥
 
bhayti-o pooraa satguroo saachaa parabh si-o nayh. ||6||
 
One who met and followed the teachings of the perfect true Guru, developed true love for God. ||6||
  
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਪੂਰਾ ਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪਿਆਉਸ ਦਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨਾਲ ਸਦਾ ਲਈ ਪੱਕਾ ਪਿਆਰ ਬਣ ਗਿਆ 
 
 بھیٹِئو پوُرا ستِگُروُ ساچا پ٘ربھ سِءُ نیہ 
 
۔ پورا ۔ ستگرؤ ۔ کامل سچا مرشد ساچا ۔ سچا نیہہ۔ پیار۔
 
جس انسان کو کامل مرشد مل گیا اس کا خدا سے پورا صدیوی پیار ہو گیا۔ 
 

 ਸਾਧ ਤੇਰੇ ਕੀ ਜਾਚਨਾ ਵਿਸਰੁ ਨ ਸਾਸਿ ਗਿਰਾਸਿ 
 
saaDhtayray kee jaachnaa visar na saas giraas.
O’ God, the prayer of Your saints is that, never let them forget You even when they are taking a breath or eating a morsel of food.
  
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਤੇਰੇ ਸੇਵਕ ਦੀ (ਤੇਰੇ ਪਾਸੋਂ ਸਦਾ ਇਹੀਮੰਗ ਹੈ ਕਿ ਸਾਹ ਲੈਂਦਿਆਂ ਰੋਟੀ ਖਾਂਦਿਆਂ ਕਦੇ ਭੀ ਨਾਹ ਵਿੱਸਰ
 
 سادھ تیرے کیِ جاچنا ۄِسرُ ن ساسِ گِراسِ 
 
جاچنا ۔ منگ۔ بھیک۔ ساس گراس۔ ہر سانت ہر لقمہ ۔
 
اے خدا تیرے پاکدامن یہ بھیک مانگتے ہیں کہ تو ہر سانس و ہر لقمہ نہ بھولیں۔
 

 ਜੋ ਤੁਧੁ ਭਾਵੈ ਸੋ ਭਲਾ ਤੇਰੈ ਭਾਣੈ ਕਾਰਜ ਰਾਸਿ ॥੭॥
 
jo tuDhbhaavai so bhalaa tayrai bhaanai kaaraj raas. ||7||
 
O’ God, whatever pleases You is good; all the affairs of the devotees are accomplished by Your will . ||7||
  
ਜੋ ਤੈਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ ਤੇਰੇ ਸੇਵਕ ਨੂੰ ਭੀ ਉਹੀ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈਤੇਰੀ ਰਜ਼ਾ ਵਿਚ ਤੁਰਿਆਂ ਤੇਰੇ ਸੇਵਕ ਦੇ ਸਾਰੇ ਕੰਮ ਸਿਰੇ ਚੜ੍ਹ ਜਾਂਦੇ ਹਨ 
 
 جو تُدھُ بھاۄےَ سو بھلا تیرےَ بھانھےَ کارج راسِ 
 
بھانے۔ رضا ۔ راس .درست۔ ٹھیک
 
اے خدا جیسی تیری رضا ہے وہی اچھا تیری رضا سے تمام کام ٹھیک ہو جاتے ہیں۔ 
 

 ਸੁਖ ਸਾਗਰ ਪ੍ਰੀਤਮ ਮਿਲੇ ਉਪਜੇ ਮਹਾ ਅਨੰਦ ॥
 
sukh saagar pareetam milay upjay mahaa anand.
Great bliss arises in a person who realizes the beloved God, the ocean of peace.
  
ਸੁਖਾਂ ਦਾ ਸਮੁੰਦਰ ਪ੍ਰੀਤਮਪ੍ਰਭੂ ਜੀ ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪੈਂਦੇ ਹਨ ਉਸ ਦੇ ਅੰਦਰ ਬੜਾ ਆਨੰਦ ਪੈਦਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
 
سُکھ ساگر پ٘ریِتم مِلے اُپجے مہا اننّد 
 
سکھ ساگر۔ آرام وآسائش کا سندر ۔ مہاں انند بھاری ۔سکون۔
 
آرام و آسائش کا سمندر خداکے ملاپ سے بھاری خوشہالی اور سکون ملتا ہے 
 

 ਕਹੁ ਨਾਨਕ ਸਭ ਦੁਖ ਮਿਟੇ ਪ੍ਰਭ ਭੇਟੇ ਪਰਮਾਨੰਦ ॥੮॥੧॥੨॥
 
kaho naanak sabhdukh mitay parabhbhaytay parmaanand. ||8||1||2||
Nanak says, all the sorrows of the one go away who realizes God, the embodiment of supreme bliss. ||8||1||2||
  
ਨਾਨਕ ਆਖਦਾ ਹੈ– ਸਭ ਤੋਂ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਆਨੰਦ ਦੇ ਮਾਲਕ ਪ੍ਰਭੂ ਜੀ ਜਿਸ ਨੂੰ ਮਿਲਦੇ ਹਨ ਉਸ ਦੇ ਸਾਰੇ ਦੁੱਖਕਲੇਸ਼ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨ 
 
 کہُ نانک سبھ دُکھ مِٹے پ٘ربھ بھیٹے پرماننّد
 
اے نانک بتادے کہ سارے عذاب مٹ جاتے ہیں جس کا ملاپ خدا سے ہو جاتا ہے ۔
 

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ਬਿਰਹੜੇ ਘਰੁ ੪ ਛੰਤਾ ਕੀ ਜਤਿ
 
aasaa mehlaa 5 birharhay ghar 4 chhantaa kee jat
 
Raag Aasaa, Fifth Guru:Birharray (hymns describing the pain of separation), Fourth beat, to be sung in the tune of the chhants.
 
 آسا مہلا  بِرہڑے گھرُ  چھنّتا کیِ جتِ 
 
برہڑے ۔ وہ کلام جن میں جدائی کا ذکر ہو۔ جت بہر۔ 
 
 ੴ ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ॥
 
ik-oNkaar satgur parsaad.
 
One eternal God, realized by the grace of the true Guru:
  
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 
 ستِگُر پ٘رسادِ 
 
ایک لازوال خدا ، سچے گرو کے فضل سے سمجھا گیا
 

 ਪਾਰਬ੍ਰਹਮੁ ਪ੍ਰਭੁ ਸਿਮਰੀਐ ਪਿਆਰੇ ਦਰਸਨ ਕਉ ਬਲਿ ਜਾਉ ॥੧॥
 
paarbarahm parabh simree-ai pi-aaray darsan ka-o bal jaa-o. ||1||
 
O’ my dear friend, we should always meditate on the all pervading God; I dedicate myself to His blessed vision. ||1||
  
ਹੇ ਪਿਆਰੇਸਦਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨਾ ਚਾਹੀਦਾ ਹੈਮੈਂ ਉਸ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਦਰਸਨ ਤੋਂ ਸਦਕੇ ਜਾਂਦਾ ਹਾਂ 
 
 پارب٘رہمُ پ٘ربھُ سِمریِئےَ پِیارے درسن کءُ بلِ جاءُ 
 
پار برہم پربھ۔ پار لگانے والا خدا کامیابی عطا کرنے والا خدا۔ سمریئے ۔ یا دکریں۔ بل جاؤ ۔قربان جاؤن
 
اس کامیابیاں عنایت کرنے والے کی یاد دیدار پر قربان ہوں۔
 

 ਜਿਸੁ ਸਿਮਰਤ ਦੁਖ ਬੀਸਰਹਿ ਪਿਆਰੇ ਸੋ ਕਿਉ ਤਜਣਾ ਜਾਇ ॥੨॥
 
jis simratdukh beesrahi pi-aaray so ki-o tajnaa jaa-ay. ||2||
O’ my dear friend, remembering whom all our sorrows depart, how can we forsake Him? ||2||
  
ਹੇ ਪਿਆਰੇਜਿਸ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕੀਤਿਆਂ ਸਾਰੇ ਦੁੱਖ ਭੁੱਲ ਜਾਂਦੇ ਹਨਉਸ ਨੂੰ ਛੱਡਣਾ ਨਹੀਂ ਚਾਹੀਦਾ 
 
 جِسُ سِمرت دُکھ بیِسرہِ پِیارے سو کِءُ تجنھا جاءِ 
 
(1) دکھ وسرے دکھ بھول جائیں۔ تجنا ۔ چھوڑنا (2)
 
جس کی یاد سے تمام عذاب بھول جائیں۔ اُسے چھوڑنا نہیں چاہیے ۔ 
 

 ਇਹੁ ਤਨੁ ਵੇਚੀ ਸੰਤ ਪਹਿ ਪਿਆਰੇ ਪ੍ਰੀਤਮੁ ਦੇਇ ਮਿਲਾਇ ॥੩॥
 
ih tan vaychee sant peh pi-aaray pareetam day-ay milaa-ay. ||3||
O’ dear, I am ready to surrender myself to that Guru who would unite me with my beloved God. ||3||
  
ਹੇ ਪਿਆਰੇਮੈਂ ਆਪਣਾ ਇਹ ਸਰੀਰ ਉਸ ਗੁਰੂ ਦੇ ਪਾਸ ਵੇਚਣ ਨੂੰ ਤਿਆਰ ਹਾਂ ਜਿਹੜਾ ਪ੍ਰੀਤਮਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਮਿਲਾ ਦੇਂਦਾ ਹੈ 
 
اِہُ تنُ ۄیچیِ سنّت پہِ پِیارے پ٘ریِتمُ دےءِ مِلاءِ 
 
سنت۔ مرشد ویچی۔ بھینٹ ۔
 
یہ جسم اس سنت کو بھینٹ کر جو خدا سے ملاپ کر ادے۔ 
 

 ਸੁਖ ਸੀਗਾਰ ਬਿਖਿਆ ਕੇ ਫੀਕੇ ਤਜਿ ਛੋਡੇ ਮੇਰੀ ਮਾਇ ॥੪॥
 
sukh seegaar bikhi-aa kay feekay taj chhoday mayree maa-ay. ||4||
 
O’ my mother, the pleasures and adornments of Maya are insipid and useless; I have renounced them. ||4||
  
ਹੇ ਮੇਰੀ ਮਾਂਮੈਂ ਮਾਇਆ ਦੇ ਸੁਖ ਮਾਇਆ ਦੇ ਸੁਹਜ ਸਭ ਛੱਡ ਦਿੱਤੇ ਹਨ (ਨਾਮਰਸ ਦੇ ਟਾਕਰੇ ਤੇ ਇਹ ਸਾਰੇਬੇਸੁਆਦੇ ਹਨ 
 
 سُکھ سیِگار بِکھِیا کے پھیِکے تجِ چھوڈے میریِ ماءِ 
 
اے میری ماں اس مایئیا کی سجاوٹ بد مزہ ہے چھوڑ دیئے 
 

 ਕਾਮੁ ਕ੍ਰੋਧੁ ਲੋਭੁ ਤਜਿ ਗਏ ਪਿਆਰੇ ਸਤਿਗੁਰ ਚਰਨੀ ਪਾਇ ॥੫॥
 
kaam kroDh lobhtaj ga-ay pi-aaray satgur charnee paa-ay. ||5||
O’ my dear, since the time I have sought the Guru’s refuge and followed his teachings, evils like lust, anger and greed have left me. ||5||
  
ਹੇ ਪਿਆਰੇਜਦੋਂ ਦਾ ਮੈਂ ਗੁਰੂ ਦੀ ਚਰਨੀਂ ਜਾ ਪਿਆ ਹਾਂਕਾਮ ਕ੍ਰੋਧ ਲੋਭ ਆਦਿਕ ਸਾਰੇ ਮੇਰਾ ਖਹਿੜਾ ਛੱਡ ਗਏ ਹਨ 
 
 کامُ ک٘رودھُ لوبھُ تجِ گۓ پِیارے ستِگُر چرنیِ پاءِ 
 
کام کرودھ۔ لوبھ شہوت۔ غصہ ۔ لالچ ۔
 
سایہ مرشد میں آنے کے بعد شہوت ۔ غصہ اور لالچ ساتھ چھوڑ گئے ۔ 
 

 ਜੋ ਜਨ ਰਾਤੇ ਰਾਮ ਸਿਉ ਪਿਆਰੇ ਅਨਤ ਨ ਕਾਹੂ ਜਾਇ ॥੬॥
 
jo jan raatay raam si-o pi-aaray anat na kaahoo jaa-ay. ||6||
 
O’ my dear, the devotees who are imbued with the love of God, do not go anywhere else. ||6||
  
ਹੇ ਪਿਆਰੇਜੇਹੜੇ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਪ੍ਰੇਮਰੰਗ ਨਾਲ ਰੰਗੇ ਜਾਂਦੇ ਹਨਉਹ (ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਛੱਡ ਕੇਕਿਸੇ ਹੋਰ ਥਾਂ ਨਹੀਂ ਜਾਂਦੇ 
 
 جو جن راتے رام سِءُ پِیارے انت ن کاہوُ جاءِ 
 
جو انسان الہٰی نام میں محو و مجذوب ہیں وہ خدا کو چھوڑ کر کہیں دوسرے پاس نہیں جاتے 
 

 ਹਰਿ ਰਸੁ ਜਿਨ੍ਹ੍ਹੀ ਚਾਖਿਆ ਪਿਆਰੇ ਤ੍ਰਿਪਤਿ ਰਹੇ ਆਘਾਇ ॥੭॥
 
 har ras jinHee chaakhi-aa pi-aaray taripat rahay aaghaa-ay. ||7||
 
O’ dear, those who have relished the elixir of God’s Name remain satisfied and satiated. ||7||
  
ਜੇਹੜੇ ਮਨੁੱਖ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਸੁਆਦ ਚੱਖ ਲੈਂਦੇ ਹਨ ਉਹ (ਮਾਇਕ ਪਦਾਰਥਾਂ ਵਲੋਂਤ੍ਰਿਪਤ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨਰੱਜ ਜਾਂਦੇ ਹਨ 
 
 ہرِ رسُ جِن٘ہ٘ہیِ چاکھِیا پِیارے ت٘رِپتِ رہے آگھاءِ 
 
ترپت رہے اگھائے ۔ انکی پیاس بجھ گئی
 
جنہوں نے الہٰی نام کا لطف لے لیا وہ ان کی خواہشات ختم ہو جاتی ہے وہ سیر ہو جاتے ہیں۔ 
 

 ਅੰਚਲੁ ਗਹਿਆ ਸਾਧ ਕਾ ਨਾਨਕ ਭੈ ਸਾਗਰੁ ਪਾਰਿ ਪਰਾਇ ॥੮॥੧॥੩॥
 
anchal gahi-aa saaDh kaa naanak bhai saagar paar paraa-ay. ||8||1||3||
 
O’ Nanak, one who grasps onto the support of the Guru, crosses over the dreadful world-ocean of vices. ||8||1||3||
  
ਹੇ ਨਾਨਕਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਗੁਰੂ ਦਾ ਪੱਲਾ ਫੜ ਲਿਆ ਉਹ ਇਸ ਭਿਆਨਕ ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 
 انّچلُ گہِیا سادھ کا نانک بھےَ ساگرُ پارِ پراءِ
 
انچل۔ دامن
 
اے نانک جس نے مرشد کا دامن تھام لیا وہ اس خوفنکا دنیاوی زندگی کے سمندر کو کامیابی سے پار کر لیتا ہے ۔
 

 ਜਨਮ ਮਰਣ ਦੁਖੁ ਕਟੀਐ ਪਿਆਰੇ ਜਬ ਭੇਟੈ ਹਰਿ ਰਾਇ ॥੧॥
 
janam marandukh katee-ai pi-aaray jab bhaytai har raa-ay. ||1||
 
O’ my dear, the pain of the cycles of birth and death is eradicated when one realizes the sovereign God. ||1||
  
ਹੇ ਪਿਆਰੇਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂਪਾਤਿਸ਼ਾਹ ਮਿਲ ਪੈਂਦਾ ਹੈ ਤਦੋਂ ਜਨਮ ਮਰਨ ਦੇ ਗੇੜ ਦਾ ਦੁੱਖ ਕੱਟਿਆ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 
 جنم مرنھ دُکھُ کٹیِئےَ پِیارے جب بھیٹےَ ہرِ راءِ 
 
اے پیارے جو شخص خدا کی محبت کو جان لیتا ہےاسے زندگی اور موت کے درد کا احساس نہیں ہوتا
 

 ਸੁੰਦਰੁ ਸੁਘਰੁ ਸੁਜਾਣੁ ਪ੍ਰਭੁ ਮੇਰਾ ਜੀਵਨੁ ਦਰਸੁ ਦਿਖਾਇ ॥੨॥
 
sundar sughar sujaan parabh mayraa jeevan daras dikhaa-ay. ||2||
 
Beautiful, virtuous, and wise God is my life; O’ God, show me Your vision. ||2||
  
ਸੋਹਣਾਸੁਚੱਜਾ ਤੇ ਸਿਆਣਾ ਪ੍ਰਭੂ ਮੇਰੀ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਹੈ ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਮੈਨੂੰ ਦਰਸ਼ਨ ਦਿਓ
 
سُنّدرُ سُگھرُ سُجانھُ پ٘ربھُ میرا جیِۄنُ درسُ دِکھاءِ 
سندر۔ خوب صورت ۔ سگھر ۔ دانشمند۔ سبحا۔ سوشمند۔ جیون درس۔ زندگی کا سبق ۔
 
اے خدا تیرا فرمان لافناہ ہے ۔ اس لئے تیری رضا ہی سب کے لئے اچھی رضا ہے اے خدا جیسی تیری رضا ہے وہی اچھی ہے۔ 
 

 ਜੋ ਜੀਅ ਤੁਝ ਤੇ ਬੀਛੁਰੇ ਪਿਆਰੇ ਜਨਮਿ ਮਰਹਿ ਬਿਖੁ ਖਾਇ ॥੩॥
 
jo jee-a tujhtay beechhuray pi-aaray janam mareh bikhkhaa-ay. ||3||
 
O’ dear God, those who are separated from You, keep going in the cycle of birth and death because eating the poison of Maya, they remain spiritually dead. ||3||
  
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਜੇਹੜੇ ਜੀਵ ਤੈਥੋਂ ਵਿਛੜੇ ਹਨ ਉਹ ਮਾਇਆ ਦਾ ਜ਼ਹਰ ਖਾ ਕੇ ਮਨੁੱਖਾ ਜਨਮ ਵਿਚ ਆਏ ਹੋਏ ਭੀ ਆਤਮਕ ਮੌਤੇ ਮਰ ਜਾਂਦੇ ਹਨ 
 
 جو جیِء تُجھ تے بیِچھُرے پِیارے جنمِ مرہِ بِکھُ کھاءِ 
 
ویچھرے ۔ وچھڑے ۔ جدائی پائے ہوئے ۔ دکھ زہر۔(2)
 
اے خدا جو انسان تجھ سے منکر و منافق ہو جاتے ہیں وہ اخلاقی و روحانی موت مرتے ہیں
 

 ਜਿਸੁ ਤੂੰ ਮੇਲਹਿ ਸੋ ਮਿਲੈ ਪਿਆਰੇ ਤਿਸ ਕੈ ਲਾਗਉ ਪਾਇ ॥੪॥
 
jis tooN mayleh so milai pi-aaray tis kai laaga-o paa-ay. ||4||
 
O’ dear God, only that person unites with You, whom You Yourself unite; I bow to that person. ||4||
  
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਜਿਸ ਜੀਵ ਨੂੰ ਤੂੰ ਆਪ ਆਪਣੇ ਨਾਲ ਮਿਲਾਂਦਾ ਹੈਂ ਉਹੀ ਤੈਨੂੰ ਮਿਲਦਾ ਹੈ ਮੈਂ ਉਸ (ਵਡਭਾਗੀਦੇ ਚਰਨੀਂ ਲੱਗਦਾ ਹਾਂ 
 
 جِسُ توُنّ میلہِ سو مِلےَ پِیارے تِس کےَ لاگءُ پاءِ 
 
پائے ۔ پاؤں ۔
 
اے خدا جسے تو خداوملاتا ہے وہی تجھ سے ملتا ہے اس کے پاؤں پڑتا ہوں۔
 

 ਜੋ ਸੁਖੁ ਦਰਸਨੁ ਪੇਖਤੇ ਪਿਆਰੇ ਮੁਖ ਤੇ ਕਹਣੁ ਨ ਜਾਇ ॥
 
jo sukhdarsan paykhtay pi-aaray mukhtay kahan na jaa-ay. ||5||
 
O’ God, the pleasure one receives upon realizing You cannot be described. ||5||
  
ਹੇ ਪਿਆਰੇ (ਪ੍ਰਭੂ)! ਤੇਰਾ ਦਰਸਨ ਕੀਤਿਆਂ ਜੇਹੜਾ ਆਨੰਦ (ਅਨੁਭਵ ਹੁੰਦਾ ਹੈਉਹ ਮੂੰਹੋਂ ਦੱਸਿਆ ਨਹੀਂ ਜਾ ਸਕਦਾ 
 
 جو سُکھُ درسنُ پیکھتے پِیارے مُکھ تے کہنھُ ن جاءِ 
 
جو سکھ درشن پیکھتے ۔ جو سکھ تیرے دیدار سے ہوتا ہے ۔ (3)
 
اے خدا جو آرام تیرے دیدار کرنے ہے وہ بیان نہیں ہو سکتا ہے ۔
 

 ਸਾਚੀ ਪ੍ਰੀਤਿ ਨ ਤੁਟਈ ਪਿਆਰੇ ਜੁਗੁ ਜੁਗੁ ਰਹੀ ਸਮਾਇ ॥੬॥
 
saachee pareet na tut-ee pi-aaray jug jug rahee samaa-ay. ||6||
 
O’ God, true love with You never breaks, it remains throughout the ages, ||6||
  
ਹੇ ਪਿਆਰੇਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਸੱਚਾ ਪਿਆਰ ਕਦੇ ਨਹੀਂ ਟੁੱਟਦਾਇਹ ਤਾਂ ਜੁਗਾਂ ਜੁਗਾਂ ਵਿਚ ਕਾਇਮ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ 
 
 ساچیِ پ٘ریِتِ ن تُٹئیِ پِیارے جُگُ جُگُ رہیِ سماءِ 
 
ساچی پریت۔ سچا پیار۔ جگ جگ رہی سمائے ۔ دائمی اور سدیوی قائم رہتی ہے 
 
سچا پیار کبھی ختم نہیں ہو سکتا وہ ہر زمانے میں اس کے دل میں قائم رہتا ہے