Urdu-Page-428

ਘਰ ਹੀ ਸੋ ਪਿਰੁ ਪਾtheyਇਆ ਸਚੈ ਸਬਦਿ ਵੀਚਾਰਿ ॥੧॥
ghar hee so pir paa-i-aa sachai sabad veechaar. ||1||
By reflecting on the Guru’s word of God’s praises, they have realized their Husband-God within their heart ||1||
ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਵਾਲੇ ਗੁਰਸ਼ਬਦ ਦੀ ਨੂੰ ਵਿਚਾਰ ਕੇ ਉਹਨਾਂ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇਘਰ ਵਿਚ ਹੀ ਲੱਭ ਲਿਆ 
 گھر ہیِ سو پِرُ پائِیا سچےَ سبدِ ۄیِچارِ 
گھر ۔ دل ۔سوپر۔ دوخاوند۔ خدا۔ ویچار۔ سوچھ سمجھ
خدا کی تعریف کے گرو کے الفاظ پر غور کرنے سے ، انہوں نے اپنے شوہر خدا کو اپنے دل میں محسوس کرلیا

 ਅਵਗਣ ਗੁਣੀ ਬਖਸਾਇਆ ਹਰਿ ਸਿਉ ਲਿਵ ਲਾਈ ॥
avgan gunee bakhsaa-i-aa har si-o liv laa-ee.
The soul-bride who has attuned herself to God, has her faults forgiven because of her previous virtues.
ਜਿਸ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਸੁਰਤ ਜੋੜ ਲਈ ਉਸ ਨੇ ਆਪਣੇ ਪਹਿਲੇ ਕੀਤੇ ਔਗੁਣ ਗੁਣਾਂ ਦੀ ਬਰਕਤ ਨਾਲ ਬਖ਼ਸ਼ਵਾ ਲਏ,
 اۄگنھ گُنھیِ بکھسائِیا ہرِ سِءُ لِۄ لائیِ 
گنی۔اوصاف اوگن بداؤساف۔ ہرسیؤ۔ تولائے ۔ پیار کرکے ۔
وہ روح دلہن جس نے خود کو خدا سے ملحق کر لیا ہے ، اس نے اپنی سابقہ خوبیوں کی وجہ سے اس کے عیب معاف کردیے ہیں

 ਹਰਿ ਵਰੁ ਪਾਇਆ ਕਾਮਣੀ ਗੁਰਿ ਮੇਲਿ ਮਿਲਾਈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
har var paa-i-aa kaamnee gur mayl milaa-ee. ||1|| rahaa-o.
The Guru united the soul-bride with God; in this way the soul-bride realized her Husband-God. ||1||Pause||
ਉਸ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦਾ ਮਿਲਾਪ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲਿਆਗੁਰੂ ਨੇ ਉਸ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੋੜ ਦਿੱਤਾ  ਰਹਾਉ 
 ہرِ ۄرُ پائِیا کامنھیِ گُرِ میلِ مِلائیِ  رہاءُ 
ہر ور ۔ خاوند خدا ۔ کامنی ۔ عورت ۔گر۔مرشد۔ میل۔ملاپ۔(1) رہاؤ۔
گرو نے روح دلہن کو خدا کے ساتھ جوڑ دیا۔ اس طرح روح دلہن نے اپنے شوہر خدا کو بھانپ لیا

 ਇਕਿ ਪਿਰੁ ਹਦੂਰਿ ਨ ਜਾਣਨ੍ਹ੍ਹੀ ਦੂਜੈ ਭਰਮਿ ਭੁਲਾਇ ॥
ik pir hadoor na jaananHee doojai bharam bhulaa-ay.
There are some soul-brides who are deluded by worldly riches and doubt; they do not understand that the Husband-God is right besides them.
ਕਈ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀਆਂ ਮਾਇਆ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਦੇ ਕਾਰਨ ਕੁਰਾਹੇ ਪੈ ਕੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਅੰਗਸੰਗ ਵੱਸਦਾ ਨਹੀਂ ਸਮਝਦੀਆਂ,
 اِکِ پِرُ ہدوُرِ ن جانھن٘ہ٘ہیِ دوُجےَ بھرمِ بھُلاءِ 
ہدور۔حاضر ناظر ۔دوجے بھرم۔ دنیاوی وہم وگمان میں۔
کچھ دلہنیں ایسی ہیں جو دنیاوی دولت اور شک کی وجہ سے دھوکہ میں ہیں۔ وہ نہیں سمجھتے کہ ان کے علاوہ شوہر خدا بھی ٹھیک ہے 

 ਕਿਉ ਪਾਇਨ੍ਹ੍ਹਿ ਡੋਹਾਗਣੀ ਦੁਖੀ ਰੈਣਿ ਵਿਹਾਇ ॥੨॥
ki-o paa-iniH dohaaganee dukhee rain vihaa-ay. ||2||
How can unfortunate soul-brides meet Him? They spend their life in misery. ||2||
ਉਹ ਮੰਦਭਾਗਣਾਂ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਕਿਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਮਿਲ ਸਕਦੀਆਂ ਹਨਉਹਨਾਂ ਦੀ (ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦੀ ਸਾਰੀਰਾਤ ਦੁੱਖਾਂ ਵਿਚ ਹੀ ਬੀਤ ਜਾਂਦੀ ਹੈ 
 کِءُ پائِن٘ہ٘ہِ ڈوہاگنھیِ دُکھیِ ریَنھِ ۄِہاءِ 
دوہاگنی ۔دوخاندوں والی۔ (2)
بدقسمتی سے دلہنیں اس سے کیسے مل سکتی ہیں؟ وہ اپنی زندگی مصائب میں گزارتے ہیں

 ਜਿਨ ਕੈ ਮਨਿ ਸਚੁ ਵਸਿਆ ਸਚੀ ਕਾਰ ਕਮਾਇ ॥
jin kai man sach vasi-aa sachee kaar kamaa-ay.
Those in whose minds the eternal God is enshrined, always do the righteous deed of singing His praises.
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਵੱਸਦਾ ਹੈਉਹ ਸਦਾ ਸਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਦੀ ਕਾਰ ਕਰਦੀਆਂ ਹਨ
 جِن کےَ منِ سچُ ۄسِیا سچیِ کار کماءِ 
سچی کار۔سچے اعمال۔
جن کے دل میں خدا بستا ہے اور اعمال نیک اور نیک کمائی کرتے ہیں 

 ਅਨਦਿਨੁ ਸੇਵਹਿ ਸਹਜ ਸਿਉ ਸਚੇ ਮਾਹਿ ਸਮਾਇ ॥੩॥
an-din sayveh sahj si-o sachay maahi samaa-ay. ||3||
They always intuitively perform devotional worship and merge with God. ||3||
ਅਡੋਲਤਾ ਨਾਲਉਹ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦੀ ਘਾਲ ਕਮਾਉਂਦੀਆਂ ਹਨ ਤੇ ਸੱਚੇ ਸਾਈਂ ਵਿੱਚ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਂਦੀਆਂ ਹਨ
 اندِنُ سیۄہِ سہج سِءُ سچے ماہِ سماءِ 
سیویہہ سہج سیؤ۔ پرسکون ہوکر خدمت ۔سچے ماہے سمائے۔ سچے خدا میں محو ومجذوب
ہر روز پر سکون حالات میں سچے خدا میں محو ومجذوب رہتے ہیں۔

 ਦੋਹਾਗਣੀ ਭਰਮਿ ਭੁਲਾਈਆ ਕੂੜੁ ਬੋਲਿ ਬਿਖੁ ਖਾਹਿ ॥
duhaaganee bharam bhulaa-ee-aa koorh bol bikhkhaahi.
The unfortunate soul-brides are lost in the illusions of worldly wealth; they practice falsehood and the poisonous Maya ruins their spiritual lives.
ਮੰਦਭਾਗਣ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀਆਂ ਮਾਇਆ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਅੰਦਰ ਭਟਕਦੀਆਂ ਹਨ ਝੂਠ ਬੋਲ ਬੋਲ ਕੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਦਾ ਜ਼ਹਰ ਖਾਂਦੀਆਂ ਹਨ
 دوہاگنھیِ بھرمِ بھُلائیِیا کوُڑُ بولِ بِکھُ کھاہِ 
خدا حقیقت سے گمراہ دؤلت کی محبت میں مبتلا ہوکر جھوٹی کار کمائی کی زہر کھاتے ہیں جو ان کے روحانی اخلاقی زندگی تباہ کر دیتا ہے 

 ਪਿਰੁ ਨ ਜਾਣਨਿ ਆਪਣਾ ਸੁੰਞੀ ਸੇਜ ਦੁਖੁ ਪਾਹਿ ॥੪॥
pir na jaanan aapnaa sunjee sayj dukh paahi. ||4||
They do not realize their Husband-God; feeling deserted, they keep suffering in misery. ||4||
ਉਹ ਆਪਣੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨਾਲ ਡੂੰਘੀ ਸਾਂਝ ਨਹੀਂ ਪਾਂਦੀਆਂਅਤੇ ਖ਼ਾਲੀ ਹਿਰਦੇ ਦੀ ਸੇਜ ਉਤੇ ਉਹ ਦੁੱਖ ਹੀ ਪਾਂਦੀਆਂ ਰਹਿੰਦੀਆਂ ਹਨ 
 پِرُ ن جانھنِ آپنھا سُنّجنْیِ سیج دُکھُ پاہِ 
دکھ۔زہر۔کوڑ۔ جھوٹھ۔ پر۔خاوند۔ خدا۔ سنیہی۔ ویران۔ بیج۔خوابگاہ۔ بروا۔ دل ودماغ
انہیں الہٰی شراکت کبھی نصیب نہیں ہوتی لہذا ان کی روح وقلب الہٰی پیار سے خالی رہتے ہیں اس لئے عذاب برداشت کرتے رہتے ہیں۔

 ਸਚਾ ਸਾਹਿਬੁ ਏਕੁ ਹੈ ਮਤੁ ਮਨ ਭਰਮਿ ਭੁਲਾਹਿ ॥
sachaa saahib ayk hai mat man bharam bhulaahi.
O’ my mind, remember that there is one and only one eternal Master-God, lest you get lost in doubts of Maya.
ਹੇ ਮੇਰੇ ਮਨ! ਚੇਤਾ ਰੱਖ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਸਿਰਫ਼ ਮਾਲਕਪ੍ਰਭੂ ਹੀ ਹੈ ਮਤਾਂ ਕਿਤੇ ਮਾਇਆ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਵਿਚ ਪੈ ਕੇ ਕੁਰਾਹੇ ਪੈ ਜਾਏਂ 
 سچا ساہِبُ ایکُ ہےَ متُ من بھرمِ بھُلاہِ 
سچا صاہب ۔ آقا۔خدا۔ ایک ۔واحد۔ مت من بھرم بھلائے ۔ اے دل وہم وگمان میں نہ بھول۔
اے دل وہم وگمان میں بھول میں نہ رہ خدا واحد ہے 

 ਗੁਰ ਪੂਛਿ ਸੇਵਾ ਕਰਹਿ ਸਚੁ ਨਿਰਮਲੁ ਮੰਨਿ ਵਸਾਹਿ ॥੫॥
gur poochh sayvaa karahi sach nirmal man vasaahi. ||5||
Enshrine the eternal immaculate God in your mind by performing His devotional worship through the Guru’s teachings. ||5||
ਗੁਰਾਂ ਦਾ ਮਸ਼ਵਰਾ ਲੈਆਪਣੇ ਸੁਆਮੀ ਦੀ ਘਾਲ ਕਮਾ ਅਤੇ ਸਦਾਥਿਰ ਪਵਿਤ੍ਰ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਚਿੱਤ ਵਿੱਚ ਟਿਕਾ 
 گُر پوُچھِ سیۄا کرہِ سچُ نِرملُ منّنِ ۄساہِ 
گرپوچھ۔ مرشد سے سبق پاکر۔ سچ نرمل من وساہے ۔ حقیقت کو پاک دل میں بسا (5)
۔ اگر سبق مرشد پاکر اس راستے پر چلے خدمت کرتے تو پاک سچ (خدا) دل میں بس جاتا ہے ۔

 ਸੋਹਾਗਣੀ ਸਦਾ ਪਿਰੁ ਪਾਇਆ ਹਉਮੈ ਆਪੁ ਗਵਾਇ ॥
sohaaganee sadaa pir paa-i-aa ha-umai aap gavaa-ay.
The fortunate soul-bride always realize her Husband-God by banishing egotism and self-conceit.
ਚੰਗੇ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰੋਂ ਹਉਮੈ ਗਵਾ ਕੇ ਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪੈਂਦੀ ਹੈ,
 سوہاگنھیِ سدا پِرُ پائِیا ہئُمےَ آپُ گۄاءِ 
ہومے آپ گوائے ۔ خودی وپناپن ختم کرکے ۔ 
نیک انسانوں کو خودی ختم کرکے ہمیشہ خدا پاتے ہیں۔

 ਪਿਰ ਸੇਤੀ ਅਨਦਿਨੁ ਗਹਿ ਰਹੀ ਸਚੀ ਸੇਜ ਸੁਖੁ ਪਾਇ ॥੬॥
 pir saytee an-din geh rahee sachee sayj sukh paa-ay. ||6||
She always remember her Husband-God and enjoys the celestial peace realizing His presence in her heart. ||6||
ਉਹ ਹਰ ਵੇਲੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਨਾਲ ਜੁੜੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈਉਸ ਦੀ ਹਿਰਦਾਸੇਜ ਅਡੋਲ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਉਹ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦੀ ਹੈ 
 پِر سیتیِ اندِنُ گہِ رہیِ سچیِ سیج سُکھُ پاءِ 
سچی سیج۔ سچے دل سے (6)
وہ خدا کے گرویدہ ہوکر پاک دل سے روحانی سکون پاتے ہیں

 ਮੇਰੀ ਮੇਰੀ ਕਰਿ ਗਏ ਪਲੈ ਕਿਛੁ ਨ ਪਾਇ ॥
mayree mayree kar ga-ay palai kichh na paa-ay.
They who departed from the world obsessed with their worldly wealth and relations, did not achieve anything in life.
ਜੇਹੜੇ ਬੰਦੇ ਇਹੀ ਆਖਦੇ ਜਗਤ ਤੋਂ ਚਲੇ ਗਏ ਕਿ ਇਹ ਮੇਰੀ ਮਾਇਆ ਹੈ ਇਹ ਮੇਰੀ ਮਲਕੀਅਤ ਹੈ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਹੱਥਪੱਲੇ ਕੁਝ ਭੀ ਨਾਹ ਪਿਆ
 میریِ میریِ کرِ گۓ پلےَ کِچھُ ن پاءِ 
پلے دامن۔ محل۔ٹھکانہ (7)
جو انسان یہ کہتے ہوئے کہ یہ میری ملکیت ہے یہ میری دولت ہے ان کا دامن ہمیشہ خالی رہا۔ ان بداوصاف کو نہیں ٹھکانہ نہیں ملتا

 ਮਹਲੁ ਨਾਹੀ ਡੋਹਾਗਣੀ ਅੰਤਿ ਗਈ ਪਛੁਤਾਇ ॥੭॥
mahal naahee dohaaganee ant ga-ee pachhutaa-ay. ||7||
The unfortunate soul-bride does not realize God’s Presence in her heart and departs repenting in the end. ||7||
ਮੰਦਭਾਗਣ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਟਿਕਾਣਾ ਨਹੀਂ ਮਿਲਦਾਉਹ ਦੁਨੀਆ ਤੋਂ ਆਖ਼ਰ ਹੱਥ ਮਲਦੀ ਹੀ ਜਾਂਦੀ ਹੈ 
 مہلُ ناہیِ ڈوہاگنھیِ انّتِ گئیِ پچھُتاءِ 
آخر پچھتائے ہوئے اس جہاں سے کوچ کر جاتے ہیں۔

 ਸੋ ਪਿਰੁ ਮੇਰਾ ਏਕੁ ਹੈ ਏਕਸੁ ਸਿਉ ਲਿਵ ਲਾਇ ॥
so pir mayraa ayk hai aykas si-o liv laa-ay.
O’ soul-bride, that Husband-God of mine is the one and only one; I remain attuned to that One alone.
ਹੇ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਸਿਰਫ਼ ਇੱਕ ਹੀ ਹੈਉਸ ਇੱਕ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਸੁਰਤਿ ਜੋੜੀ ਰੱਖ
 سو پِرُ میرا ایکُ ہےَ ایکسُ سِءُ لِۄ لاءِ 
اے انسان خدا واحد ہے اس سے پیار کر۔

 ਨਾਨਕ ਜੇ ਸੁਖੁ ਲੋੜਹਿ ਕਾਮਣੀ ਹਰਿ ਕਾ ਨਾਮੁ ਮੰਨਿ ਵਸਾਇ ॥੮॥੧੧॥੩੩॥
naanak jay sukh lorheh kaamnee har kaa naam man vasaa-ay. ||8||11||33||
O Nanak, if the soul-bride longs for spiritual peace, she should enshrine God’s Name within her mind. ||8||11||33||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਆਖ-) ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਜੇ ਤੂੰ ਸੁਖ ਹਾਸਲ ਕਰਨਾ ਚਾਹੁੰਦੀ ਹੈਂ ਤਾਂ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਵਸਾਈ ਰੱਖ ੧੧੩੩
 نانک جے سُکھُ لوڑہِ کامنھیِ ہرِ کا نامُ منّنِ ۄساءِ
کامنی ۔ عورت ۔ انسان۔ ہرکانام۔ الہٰی سچ یاحقیقت
اے نانک جو انسان آرام و آسائش چاہتا ہے اسے چاہیئے کہ الہٰی نام یعنی سچ اور حقیقت دل میں بسائے

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੩ ॥
aasaa mehlaa 3.
Raag Aasaa, Third Guru:
 آسا مہلا 
 ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਜਿਨ੍ਹ੍ਹਾ ਚਖਾਇਓਨੁ ਰਸੁ ਆਇਆ ਸਹਜਿ ਸੁਭਾਇ ॥
amrit jinHaa chhakhaa-i-on ras aa-i-aa sahj subhaa-ay.
Those whom God has helped to taste the ambrosial nectar, they intuitively enjoyed its taste.
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੂੰ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਨਾਮਜਲ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨੇ ਆਪ ਚਖਾਇਆਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ ਵਿਚ ਪ੍ਰੇਮ ਵਿਚ ਟਿਕ ਕੇ ਉਸ ਦਾ ਸੁਆਦ  ਗਿਆ,
 انّم٘رِتُ جِن٘ہ٘ہا چکھائِئونُ رسُ آئِیا سہجِ سُبھاءِ 
انمرت۔ آب حیات۔ روحانی زندگی عنایت کرنے والا پانی۔ چکھایون۔ اس نے چکھایئیا۔ رس لطف۔ مزہ ۔ سہج سبھائے ۔ روحانی سکون اور پریم میں
جنہیں آب حیات کا لطف خدا نے خود چکھایئیا ہے انہیں روحانی سکون میں لطف لیا۔ 

 ਸਚਾ ਵੇਪਰਵਾਹੁ ਹੈ ਤਿਸ ਨੋ ਤਿਲੁ ਨ ਤਮਾਇ ॥੧॥
sachaa vayparvaahu hai tis no til na tamaa-ay. ||1||
God has no worries and He does not have even an iota of greed. ||1||
 ਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂ ਬੇਮੁਥਾਜ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ ਰਤਾ ਭਰ ਭੀ ਲਾਲਚ ਨਹੀਂ ਹੈ 
 سچا ۄیپرۄاہُ ہےَ تِس نو تِلُ ن تماءِ 
۔ تل نہ تماء۔ ذرہ بھر لالچ نہیں
سچا خدا بے محتاج ہے اسے رتی بھر بھی لالچ نہیں ہے

 ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਸਚਾ ਵਰਸਦਾ ਗੁਰਮੁਖਾ ਮੁਖਿ ਪਾਇ ॥
amrit sachaa varasdaa gurmukhaa mukh paa-ay.
The ambrosial nectar of God’s Name always keeps raining down everywhere but only the Guru’s followers partake it,
ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਨਾਮਜਲ ਹਰ ਥਾਂ ਵਰ੍ਹ ਰਿਹਾ ਹੈਪਰ ਇਹ ਪੈਂਦਾ ਹੈ ਉਹਨਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਦੇ ਮੂੰਹ ਵਿਚ ਜੋ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸਨਮੁਖ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ
 انّم٘رِتُ سچا ۄرسدا گُرمُکھا مُکھِ پاءِ 
انمرت سچا ورسدا۔ سچا آب حیا کی بارش ہو رہی ہے ۔ گورمکھا۔ مریدان مرشد ہریاولا۔
وہ وہی کام کرتے ہیں پہلے کیے اعمالات کے مطابق جو ان کی پیشانی و اعمالنامے میں تحریر و کندہ ہوتے ہیں۔ اے انسان آب حیات کی بارش ہو رہی ہے

 ਮਨੁ ਸਦਾ ਹਰੀਆਵਲਾ ਸਹਜੇ ਹਰਿ ਗੁਣ ਗਾਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
man sadaa haree-aavlaa sehjay har gun gaa-ay. ||1|| rahaa-o.
and their mind always remains in bloom by intuitively singing God’s praises. ||1||Pause||
ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ ਵਿਚ ਟਿਕ ਕੇ ਹਰੀ ਦੇ ਗੁਣ ਗਾ ਗਾ ਕੇ ਉਹਨਾਂ ਦਾ ਮਨ ਸਦਾ ਖਿੜਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 منُ سدا ہریِیاۄلا سہجے ہرِ گُنھ گاءِ  رہاءُ 
سچے ہرگن گائے ۔ پرسکون الہٰی حمدوثناہ کرنے سے (1) رہاؤ
جس سے دل کھلا رہتا ہے جو ہمیشہ پر سکون ہوکر الہٰی حمدوثناہ کرتے ہیں جو مر ریدان مرشد کے منہ میں پڑ رہا ہے ۔

 ਮਨਮੁਖਿ ਸਦਾ ਦੋਹਾਗਣੀ ਦਰਿ ਖੜੀਆ ਬਿਲਲਾਹਿ ॥
manmukh sadaa duhaaganee dar kharhee-aa billaahi.
The self-conceited soul-brides always remain separated from God; they wail endlessly even when God is present right in their heart.
ਮਨਮੁਖ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀਆਂ ਸਦਾ ਮੰਦਭਾਗਣਾਂ ਰਹਿੰਦੀਆਂ ਹਨ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਦਰ ਤੇ ਖਲੋਤੀਆਂ (ਭੀਵਿਲਕਦੀਆਂ ਹੀ ਹਨ
 منمُکھِ سدا دوہاگنھیِ درِ کھڑیِیا بِللاہِ 
۔ منمکھ۔ مرید من۔ خودی پسند ۔وہاگنی۔ دوارادوں والا۔ دو خاندوں والی عورت۔ بللاہ۔ آہ وزاری۔
۔ مرید من ہمشیہ دوچتی میں آہ وزاری کرتے ہیں

 ਜਿਨ੍ਹ੍ਹਾ ਪਿਰ ਕਾ ਸੁਆਦੁ ਨ ਆਇਓ ਜੋ ਧੁਰਿ ਲਿਖਿਆ ਸੋੁ ਕਮਾਹਿ ॥੨॥
jinHaa pir kaa su-aad na aa-i-o jo Dhur likhi-aa so kamaahi. ||2||
Those who have never enjoyed the relish of union with their Husband-God, can only do deeds according to their preordained destiny. ||2||
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੇ ਮਿਲਾਪ ਦਾ ਕਦੇ ਸੁਆਦ ਨਹੀਂ ਆਇਆ ਉਹ ਉਹੀ ਕਰਮ ਕਰਦੀਆਂ ਹਨ ਜੋ ਧੁਰ ਦਰਗਾਹ ਤੋਂ ਉਨ੍ਹਾਂ ਦੇ ਭਾਗਾਂ ਵਿੱਚ ਲਿਖਿਆ ਹੈ
 جِن٘ہا پِر کا سُیادُ ن آئِئو جو دھُرِ لِکھِیا سُ کماہِ 
سوآد۔ لطف ۔ مزہ ۔
وہ لوگ جنہوں نے کبھی اپنے شوہر خدا کے ساتھ مل جانے کا لطف اٹھایا نہیں ، وہ صرف اپنے طے شدہ تقدیر کے مطابق کام کرسکتے ہیں۔

 ਗੁਰਮੁਖਿ ਬੀਜੇ ਸਚੁ ਜਮੈ ਸਚੁ ਨਾਮੁ ਵਾਪਾਰੁ ॥
 gurmukh beejay sach jamai sach naam vaapaar.
The Guru’s follower plants true Name in his heart, Naam sprouts in his heart and he meditates on Naam.
ਗੁਰੂ ਦੇ ਸਨਮੁਖ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਮਨੁੱਖ ਸਦਾਥਿਰ ਹਰਿਨਾਮ (ਆਪਣਾ ਹਿਰਦਾਖੇਤ ਵਿਚਬੀਜਦਾ ਹੈ ਇਹ ਨਾਮ ਹੀ ਉਥੇ ਹੀ ਉੱਗਦਾ ਹੈਸਦਾਥਿਰ ਨਾਮ ਨੂੰ ਹੀ ਉਹ ਆਪਣਾ ਵਣਜਵਪਾਰ ਬਣਾਂਦਾ ਹੈ
گُرمُکھِ بیِجے سچُ جمےَ سچُ نامُ ۄاپارُ 
گورمکھ۔ مرید مرشد۔ بیجے سچ۔ سچ بوتا ہے ۔ جمے سچ۔ سچ پیدا ہوتا ہے ۔ سچ نام۔ سچے نام مراد سچ ۔
مرید مرشد ہمیشہ سچ بوتا ہے مراد سچے اعمال کرتا ہے جس سے سچا پھل پاتا ہے اور سچ اور حقیقت کی ہی خریدو فروخت کرتا ہے 

 ਜੋ ਇਤੁ ਲਾਹੈ ਲਾਇਅਨੁ ਭਗਤੀ ਦੇਇ ਭੰਡਾਰ ॥੩॥
jo it laahai laa-i-anbhagtee day-ay bhandaar. ||3||
God bestows the treasure of devotional worship to those whom He has attached to this profitable venture of meditation. ||3||
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਇਸ ਲਾਭਵੰਦੇ ਕੰਮ ਵਿਚ ਲਾਇਆ ਹੈ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਆਪਣੀ ਭਗਤੀ ਦੇ ਖ਼ਜ਼ਾਨੇ ਦੇ ਦੇਂਦਾ ਹੈ 
 جو اِتُ لاہےَ لائِئنُ بھگتیِ دےءِ بھنّڈار 
لاہے ۔ اس کا منافع۔ لائین۔ لیتے ہیں۔ کماتے ہیں۔ بھگتی دئے ۔ بھنڈا ۔ بھگتی کے خزانے دیتا ہے ۔(3)
مراد اس کے تمام کام سچ اور حقیقت پر مبنی اور منحصر ہوتے ہیں جنہیں ایسے منافع بخش کام میں لگاتاہے انہیں خوف و ادب کے خزانے عنایت کرتا ہے ۔

 ਅਨਦਿਨੁ ਰਾਵਹਿ ਪਿਰੁ ਆਪਣਾ ਸਚੁ ਰਖਹਿ ਉਰ ਧਾਰਿ ॥੪॥
an-din raaveh pir aapnaa sach rakheh ur Dhaar. ||4||
They always enjoy the company of their Husband-God and keep Him enshrined in their hearts. ||4||
ਉਹ ਹਰ ਵੇਲੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦਾ ਮਿਲਾਪ ਮਾਣਦੀਆਂ ਹਨਉਹ ਸਦਾਥਿਰ ਹਰਿਨਾਮ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਟਿਕਾ ਕੇ ਰੱਖਦੀਆਂ ਹਨ 
 اندِنُ راۄہِ پِرُ آپنھا سچُ رکھہِ اُر دھارِ 
راویہہ۔ صرف کرنا۔ مصروفیت ۔
مریدان مرشد خوش قسمت اور خوش اخلاق ہیں وہ ہمیشہ خوف و ادب میں رہ کر اپنا روحانی زندگی خشگوار بناتے ہیں اور ہر روز الہٰی ملاپ میں گذرتا ہے اور ہر وقت سچ اور حقیقت دل میں بساتے ہیں۔

 ਜਿਨ੍ਹ੍ਹਾ ਪਿਰੁ ਰਾਵਿਆ ਆਪਣਾ ਤਿਨ੍ਹ੍ਹਾ ਵਿਟਹੁ ਬਲਿ ਜਾਉ ॥
jinHaa pir raavi-aa aapnaa tinHaa vitahu bal jaa-o.
I dedicate myself to those soul-brides who have enjoyed the company of their Husband-God.
ਮੈਂ ਕੁਰਬਾਨ ਜਾਂਦਾ ਹਾਂ ਉਹਨਾਂ ਤੋਂ ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੇ ਮਿਲਾਪ ਨੂੰ ਸਦਾ ਮਾਣਿਆ ਹੈ,
 جِن٘ہ٘ہا پِرُ راۄِیا آپنھا تِن٘ہ٘ہا ۄِٹہُ بلِ جاءُ 
پر خاوند۔ خدا۔ تن وٹہوں ۔ ان پر۔ اردھار دلمیں بسا کر۔ (4)
میں قربان ہوں ان پر جنہوں نے خودی ختم کرکے ہمیشہ الہٰی ملاپ میں رہتے ہیں۔

 ਤਨੁ ਮਨੁ ਸੀਤਲੁ ਮੁਖ ਉਜਲੇ ਪਿਰ ਕੈ ਭਾਇ ਪਿਆਰਿ ॥
tan man seetal mukh ujlay pir kai bhaa-ay pi-aar.
Those who are imbued with the love of their Husband-God, their body and mind remain cool and calm and they are honored here and hereafter.
ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੇ ਪ੍ਰੇਮ ਪਿਆਰ ਵਿਚ ਰਹਿਣ ਵਾਲੀਆਂ ਦਾ ਤਨ ਤੇ ਮਨ ਠੰਢਾਠਾਰ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਮੂੰਹ ਲੋਕ ਪਰਲੋਕ ਵਿਚ ਰੌਸ਼ਨ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨ
 تنُ منُ سیِتلُ مُکھ اُجلے پِر کےَ بھاءِ پِیارِ 
سیتل۔ ٹھنڈا۔ اُجلے ۔ سرخرو ۔ بھائے ۔ چاہت۔
خدا کے پیار میں رہنے والے دل میں ٹھنڈک اور سکون پاتے ہیں اور ہر دو جہانوں میں سرخرو رہتے ہیں ۔

 ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਘਰਿ ਆਇਆ ਗੁਰ ਕੈ ਹੇਤਿ ਅਪਾਰਿ ॥
 kar kirpaa ghar aa-i-aa gur kai hayt apaar.
Granting His grace, He comes into the heart of a soul-bride, through infinite love for the Guru,
ਪ੍ਰਭੂ ਕਿਰਪਾ ਕਰ ਕੇ ਜਿਸ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਦੇ ਹਿਰਦੇਘਰ ਵਿਚ  ਵੱਸਦਾ ਹੈ,ਗੁਰੂ ਦੀ ਅਪਾਰ ਮੇਹਰ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ
کرِ کِرپا گھرِ آئِیا گُر کےَ ہیتِ اپارِ 
ہیت۔ پریم پیار۔
مرشد کی از حد کرم وعنایت سے جس کے دل میں خدا بس جاتا ہے اسے الہٰی ملاپ حاصل ہوجاتا ہے

 ਵਰੁ ਪਾਇਆ ਸੋਹਾਗਣੀ ਕੇਵਲ ਏਕੁ ਮੁਰਾਰਿ ॥੭॥
var paa-i-aa sohaaganee kayval ayk muraar. ||7||
that fortunate soul-bride unites with Husband-God, who is the one and only one like Him. ||7||
ਉਹ ਸੁਭਾਗਣ ਉਸ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪੈਂਦੀ ਹੈ ਜੋ ਆਪਣੇ ਵਰਗਾ ਇਕ ਆਪ ਹੀ ਹੈ 
 ۄرُ پائِیا سوہاگنھیِ کیۄل ایکُ مُرارِ 
ورپایئیا۔ ملاپ ہوا۔ سوہاگنی ۔ خوش اخلاق (7)
جس کا دنیا میں کوئی ثانی نہیں سارے عالم میں واحد ہستی ہے

 ਸਭੇ ਗੁਨਹ ਬਖਸਾਇ ਲਇਓਨੁ ਮੇਲੇ ਮੇਲਣਹਾਰਿ ॥
sabhay gunah bakhsaa-ay la-i-on maylay maylanhaar.
The Guru have all his sins forgiven; God unites him with Himself.
ਗੁਰੂ ਜੀ ਉਸ ਦੇ ਸਾਰੇ ਗੁਨਾਹ ਮੁਆਫ ਕਰਵਾ ਦਿੰਦੇ ਹਨ ਅਤੇ ਮਿਲਾਉਣ ਵਾਲਾ ਉਸ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਨਾਲ ਮਿਲਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ
 سبھے گُنہ بکھساءِ لئِئونُ میلے میلنھہارِ 
جب ملانے والا مل جاتا ہے تو تمام گناہ معاف کر دیتا ہے ۔

 ਨਾਨਕ ਆਖਣੁ ਆਖੀਐ ਜੇ ਸੁਣਿ ਧਰੇ ਪਿਆਰੁ ॥੮॥੧੨॥੩੪॥
naanak aakhan aakhee-ai jay sunDharay pi-aar. ||8||12||34||
O’ Nanak, we should utter such words of God’s praises, hearing which He may love us. ||8||12||34||
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਦਾ ਬੋਲ ਹੀ ਬੋਲਣਾ ਚਾਹੀਦਾ ਹੈ ਜਿਸ ਨੂੰ ਸੁਣ ਕੇ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ (ਸਾਡੇ ਨਾਲਪਿਆਰ ਕਰੇ ੧੨੩੪
 نانک آکھنھُ آکھیِئےَ جے سُنھِ دھرے پِیارُ ੧੨੩੪
آکھن۔ اکھان ۔ محاورے
اے نانک ایسے الفاظ زبان سے نکالنے چاہیے جنہیں سن کر خدا محبت کرئے ۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੩ ॥
aasaa mehlaa 3.
Raag Aasaa, Third Guru:
 آسا مہلا 
 ਸਤਿਗੁਰ ਤੇ ਗੁਣ ਊਪਜੈ ਜਾ ਪ੍ਰਭੁ ਮੇਲੈ ਸੋਇ ॥
satgur tay gun oopjai jaa parabh maylai so-ay.
When God causes us to meet the Guru, then the Guru blesses us with virtues,
ਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂ ਗੁਰੂ ਨਾਲ ਮਿਲਾ ਦੇਂਦਾ ਹੈ ਤਦੋਂ ਗੁਰੂ ਪਾਸੋਂ ਗੁਣਾਂ ਦੀ ਦਾਤ ਮਿਲਦੀ ਹੈ,
 ستِگُر تے گُنھ اوُپجےَ جا پ٘ربھُ میلےَ سوءِ 
ستگر۔ سچے مرشد۔ گن اپجے ۔ اؤصاف پیدا ہوتے ہیں ملتے ہیں ۔جاپربھ میلے سوئے ۔ اگر خدا اسے ملائے ۔
جب خدا سچے مرشد سے ملاپ کرادیتا ہے تب مرشد سے اوصاف ہی کے تحفے حاصل وہوتے ہیں۔