Urdu-Page-417

SGGS Page 417
ਰਾਗੁ ਆਸਾ ਮਹਲਾ  ਅਸਟਪਦੀਆ ਘਰੁ 
raag aasaa mehlaa 1 asatpadee-aa ghar 3
Raag Aasaa, Third beat, Ashtapadees, First Guru:
 راگُ آسا مہلا  اسٹپدیِیا گھرُ 
گرونانک صاحب اس اشٹ پدی میں نہ صرف اس میں تاریخی ذکر کرتے ہیں۔ بلکہ روحآنی ذکر بھی ہے کہ خدا کو بھلا کر دوسرے اعمالوں میں مصروفیت کے نتائج بتاتے ہیں اور سمجھاتے ہیں کہ اگر خدا کو یاد کیا جاتا یہ سزا کیوں ملتی کوئی فوج ہتھیاروں کی کمی کی وجہ سے شکست نہیں کھاتی صرف نیکی اور الہٰی پیار کو بھلا کر شکست کھاتی ہے جس تو آپ کھوآئے کرتا کھس لئے چنگیایئیاں جسے خدا نے ذلیل و خوار کرنا ہوتا ہے اس سے نکی او ر نیک اعمال چھین لیتا ہے ۔ 


راگ آسا ، پہلا گرو:
 ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ 
ik-oNkaar satgur parsaad.
One Eternal God, realized by the grace of the true Guru:
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 ستِگُر پ٘رسادِ 
ایک لازوال خدا ، جو سچے گرو کے فضل سے محسوس ہوا


ਜਿਨ ਸਿਰਿ ਸੋਹਨਿ ਪਟੀਆ ਮਾਂਗੀ ਪਾਇ ਸੰਧੂਰੁ 
jin sir sohan patee-aa maaNgee paa-ay sanDhoor.
The heads of those girls which used to be adorned with tresses and partings filled with vermillion,
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਸੁੰਦਰੀਆਂ ਦੇ ਸਿਰ ਉਤੇ ਕੇਸਾਂ ਦੇ ਵਿਚਕਾਰਲੇ ਚੀਰ ਵਿਚ ਸੰਧੂਰ ਪਾ ਕੇ ਕਾਲੇ ਕੇਸਾਂ ਦੀਆਂ ਪੱਟੀਆਂ ਹੁਣ ਤਕ ਸੋਭਦੀਆਂ  ਰਹੀਆਂ ਸਨ,
 جِن سِرِ سوہنِ پٹیِیا ماںگیِ پاءِ سنّدھوُرُ 
جن سر۔ سر کے اوپر۔ سوہن۔ خوبصورت لگتی ہیں۔ مانگ سر کے درمیان یکر۔
وہ لڑکیوں کے سر جو ورمیلین سے بھرے ہوئے تاروں اور تشنوں سے مزین تھے


ਸੇ ਸਿਰ ਕਾਤੀ ਮੁੰਨੀਅਨ੍ਹ੍ਹਿ ਗਲ ਵਿਚਿ ਆਵੈ ਧੂੜਿ 
say sir kaatee munnee-aniH gal vich aavai Dhoorh.
those heads are being sheared with scissors and their throats are being choked with dust.
 ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਸਿਰ ਕੈਂਚੀ ਨਾਲ ਮੁਨੇ ਜਾ ਰਹੇ ਹਨ ਤੇ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਗਲ ਵਿੱਚ ਮਿੱਟੀ ਪੈ ਰਹੀ ਹੈ
 سے سِر کاتیِ مُنّنیِئن٘ہ٘ہِ گل ۄِچِ آۄےَ دھوُڑِ 
کاتی ۔ گینچی ۔ منیئن۔ بال کاٹے جارہے ہیں ۔ وہوڑ ۔ گرد۔ مٹی ۔ خدو ۔ ساہمنے نزدیک۔
ان سروں کو کینچی سے کینچی جارہی ہے اور ان کے گلے دھول کے ساتھ دبائے جارہے ہیں۔


ਮਹਲਾ ਅੰਦਰਿ ਹੋਦੀਆ ਹੁਣਿ ਬਹਣਿ  ਮਿਲਨ੍ਹ੍ਹਿ ਹਦੂਰਿ 
mehlaa andar hodee-aa hun bahan na milniH hadoor. ||1||
They used to live in palatial mansions but now they are not even allowed near those palaces. ||1||
ਜੇਹੜੀਆਂ ਪਹਿਲਾਂ ਆਪਣੇ ਮਹਲਾਂ ਵਿਚ ਵੱਸਦੀਆਂ ਸਨਹੁਣ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਉਹਨਾਂ ਮਹਲਾਂ ਦੇ ਕਿਤੇ ਨੇੜੇ ਭੀ ਢੁਕਣ ਨਹੀਂ ਦਿੱਤਾ ਜਾਂਦਾ 
 مہلا انّدرِ ہودیِیا ہُنھِ بہنھِ ن مِلن٘ہ٘ہِ ہدوُرِ 
وہ محلات کی حویلیوں میں رہتے تھے لیکن اب ان محلات کے قریب ان کی بھی اجازت نہیں ہے۔


ਆਦੇਸੁ ਬਾਬਾ ਆਦੇਸੁ 
aadays baabaa aadays.
O’ primal God, I salute and bow to You.
ਹੇ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖਨਮਸਕਾਰ ਤੈਨੂੰ ਨਮਸਕਾਰ ਹੈ,
 آدیسُ بابا آدیسُ 
آدیس ۔ سلام۔
اصلی خدا، میں نے سلام پیش کرتے ہیں اور کرنے کے دخش تم 


ਆਦਿ ਪੁਰਖ ਤੇਰਾ ਅੰਤੁ  ਪਾਇਆ ਕਰਿ ਕਰਿ ਦੇਖਹਿ ਵੇਸ  ਰਹਾਉ 
aad purakh tayraa ant na paa-i-aa kar kar daykheh vays. ||1|| rahaa-o.
O’God, we are unable to comprehend Your worldly plays; You continuously create and behold these plays in many different ways. ||1||Pause||
ਹੇ ਆਦਿ ਪੁਰਖਤੇਰੇ ਭਾਣਿਆਂ ਦਾ ਸਾਨੂੰ ਭੇਤ ਨਹੀਂ ਮਿਲਦਾ ਤੂੰ ਇਹ ਭਾਣੇ ਆਪ ਹੀ ਕਰ ਕੇ ਆਪ ਹੀ ਵੇਖ ਰਿਹਾ ਹੈਂ  ਰਹਾਉ 
 آدِ پُرکھ تیرا انّتُ ن پائِیا کرِ کرِ دیکھہِ ۄیس  رہاءُ 
آد پرکھ۔ خدا انت۔ اخیر۔ دیس گئی ۔ قسم کے حالات پیدا کرے (
1) رہاؤ۔
خدا ، ہم آپ کے دنیاوی کھیلوں کو سمجھنے سے قاصر ہیں ۔ آپ ان ڈراموں کو متعدد مختلف طریقوں سے مستقل طور پر تخلیق کرتے اور دیکھتے ہیں۔


ਜਦਹੁ ਸੀਆ ਵੀਆਹੀਆ ਲਾੜੇ ਸੋਹਨਿ ਪਾਸਿ 
jadahu see-aa vee-aahee-aa laarhay sohan paas.
When these ladies were married, their grooms looked handsome beside them.
ਜਦੋਂ ਉਹ ਸੁੰਦਰੀਆਂ ਵਿਆਹੀਆਂ ਆਈਆਂ ਸਨਉਹਨਾਂ ਦੇ ਕੋਲ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਲਾੜੇ ਸੋਹਣੇ ਲੱਗ ਰਹੇ ਸਨ,
 جدہُ سیِیا ۄیِیاہیِیا لاڑے سوہنِ پاسِ 
لاڑے ۔ خاوند۔ سوہن۔ خوبصورت ۔
جب ان خواتین کی شادی ہوئی تھی تو ، ان کے ساتھ ساتھ ان کے دولہے خوبصورت لگ رہے تھے۔ 


ਹੀਡੋਲੀ ਚੜਿ ਆਈਆ ਦੰਦ ਖੰਡ ਕੀਤੇ ਰਾਸਿ 
heedolee charh aa-ee-aa dand khand keetay raas.
They came riding on palanquins and their arms were adorned with ivory bangles. 
ਉਹ ਪਾਲਕੀਆਂ ਵਿਚ ਚੜ੍ਹ ਕੇ ਆਈਆਂ ਸਨ, (ਉਹਨਾਂ ਦੀਆਂ ਬਾਹਾਂ ਉਤੇਹਾਥੀਦੰਦ ਦੇ ਚੂੜੇ ਸਜੇ ਹੋਏ ਸਨ
 ہیِڈولیِ چڑِ آئیِیا دنّد کھنّڈ کیِتے راسِ 
ہیڈولی ۔ پالکی۔ ون کھنڈ۔ ہاتھی دانت۔ راس سچائے ۔
وہ پالکیوں پر سوار ہوکر آئے تھے اور ان کے بازو ہاتھی دانت کی چوڑیوں سے مزین تھے۔


ਉਪਰਹੁ ਪਾਣੀ ਵਾਰੀਐ ਝਲੇ ਝਿਮਕਨਿ ਪਾਸਿ 
uprahu paanee vaaree-ai jhalay jhimkan paas. ||2||
Pot of ceremonial water was circled over their heads (a ritual to greet the bride) and glass studded fans were glittering in their hands. ||2||
ਸਹੁਰੇਘਰ ਆਈਆਂ ਦੇ ਉਤੋਂ ਦੀ ਸਗਨਾਂ ਦਾ ਪਾਣੀ ਵਾਰਿਆ ਜਾਂਦਾ ਸੀਸ਼ੀਸ਼ਿਆਂਜੜੇ ਪੱਖੇ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਹੱਥਾਂ ਵਿਚ ਲਿਸ਼ਕ ਰਹੇ ਸਨ 
 اُپرہُ پانھیِ ۄاریِئےَ جھلے جھِمکنِ پاسِ 
جھلے ۔ پنکھے ۔ جھمگن ۔ شک مارتے ۔ (
2)
رسمی پانی کا برتن ان کے سر پر چکر لگایا گیا تھا (دلہن کا استقبال کرنے کی رسم) اور شیشے سے جکڑے ہوئے مداح ان کے ہاتھوں میں چمک رہے تھے۔ 


ਇਕੁ ਲਖੁ ਲਹਨ੍ਹ੍ਹਿ ਬਹਿਠੀਆ ਲਖੁ ਲਹਨ੍ਹ੍ਹਿ ਖੜੀਆ 
ik lakh lehniH behthee-aa lakh lehniH kharhee-aa.
Hundreds of thousands coins were given to them as welcome gifts.
(ਸਹੁਰੇਘਰ  ਕੇਬੈਠੀਆਂ ਉਹ ਇਕ ਇਕ ਲੱਖ ਰੁਪਈਆ (ਸਗਨਾਂ ਦਾਲੈਂਦੀਆਂ ਸਨਖਲੋਤੀਆਂ ਭੀ ਲੈਂਦੀਆਂ ਸਨ
 اِکُ لکھُ لہن٘ہ٘ہِ بہِٹھیِیا لکھُ لہن٘ہ٘ہِ کھڑیِیا 
لاکھوں سکے ان کو خوش آمدید تحائف کے طور پر دیئے گئے۔ 


ਗਰੀ ਛੁਹਾਰੇ ਖਾਂਦੀਆ ਮਾਣਨ੍ਹ੍ਹਿ ਸੇਜੜੀਆ 
garee chhuhaaray khaaNdee-aa maanniH sayjrhee-aa.
They munched on dried coconuts and dates and enjoyed bridal beds.
ਗਰੀਛੁਹਾਰੇ ਖਾਂਦੀਆਂ ਸਨਤੇ ਸੋਹਣੀਆਂ ਸੇਜਾਂ ਮਾਣਦੀਆਂ ਸਨ
 گریِ چھُہارے کھاںدیِیا مانھن٘ہ٘ہِ سیجڑیِیا 
سیڑھیاں۔ خوابگا ہ۔
انہوں نے سوکھے ناریل اور کھجوروں پر چپراسی کی اور دلہن کے بستروں سے لطف اندوز ہوئے۔ 


ਤਿਨ੍ਹ੍ ਗਲਿ ਸਿਲਕਾ ਪਾਈਆ ਤੁਟਨ੍ਹ੍ਹਿ ਮੋਤਸਰੀਆ 
tinH gal silkaa paa-ee-aa tutniH motsaree-aa. ||3||
But now their pearl necklaces are being snatched by the evil soldiers (of Babar, the Mugal invader) and instead ropes have been put around their necks. ||3||
(ਅੱਜਉਹਨਾਂ ਦੇ ਗਲ ਵਿਚ (ਜ਼ਾਲਮਾਂ ਨੇਰੱਸੀਆਂ ਪਾਈਆਂ ਹੋਈਆਂ ਹਨਉਹਨਾਂ ਦੇ (ਗਲ ਪਏਮੋਤੀਆਂ ਦੇ ਹਾਰ ਟੁੱਟ ਰਹੇ ਹਨ 
 تِن٘ہ٘ہ گلِ سِلکا پائیِیا تُٹن٘ہ٘ہِ موتسریِیا 
سلکاں۔ رسیاں۔ موتسریاں۔ موتیوں کی مالائیں۔ (
3)
لیکن اب ان کے موتیوں کے ہار بری فوج (بابر ، مغل حملہ آور) کے ذریعہ چھین رہے ہیں اور اس کے بجائے ان کی گردنوں میں رسیاں ڈال دی گئیں ہیں۔ 


ਧਨੁ ਜੋਬਨੁ ਦੁਇ ਵੈਰੀ ਹੋਏ ਜਿਨ੍ਹ੍ਹੀ ਰਖੇ ਰੰਗੁ ਲਾਇ 
Dhan joban du-ay vairee ho-ay jinHee rakhay rang laa-ay.
Their worldly wealth and youthful beauty, which gave them so much pleasure, have now become their enemies.
(ਉਹਨਾਂ ਦਾਧਨ ਤੇ ਜੋਬਨਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੇ ਉਹਨਾਂ ਸੁੰਦਰੀਆਂ ਨੂੰ ਨਸ਼ਾ ਚਾੜ੍ਹਿਆ ਹੋਇਆ ਸੀਅੱਜ ਦੋਵੇਂ ਹੀ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਵੈਰੀ ਬਣੇ ਹੋਏ ਹਨ
 دھنُ جوبنُ دُءِ ۄیَریِ ہوۓ جِن٘ہ٘ہیِ رکھے رنّگُ لاءِ 
دھن جو بن ۔ دؤلت اور جوانی ۔ رنگ لائے ۔ پریتم پیارے سے
ان کی دنیاوی دولت اور جوانی خوبصورتی ، جس نے انہیں بہت خوشی دی ، اب ان کے دشمن بن چکے ہیں۔


ਦੂਤਾ ਨੋ ਫੁਰਮਾਇਆ ਲੈ ਚਲੇ ਪਤਿ ਗਵਾਇ 
dootaa no furmaa-i-aa lai chalay pat gavaa-ay.
The invader had ordered his evil soldiers to dishonor and drive them away.
(ਬਾਬਰ ਨੇਜ਼ਾਲਮ ਸਿਪਾਹੀਆਂ ਨੂੰ ਹੁਕਮ ਦੇ ਰੱਖਿਆ ਹੈਉਹ ਉਹਨਾਂ ਦੀ ਇੱਜ਼ਤ ਗਵਾ ਕੇ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਲੈ ਜਾ ਰਹੇ ਹਨ
 دوُتا نو پھُرمائِیا لےَ چلے پتِ گۄاءِ 
دوناں۔ ظالم دشمناں ۔ پت عزت ۔
حملہ آور نے اپنے شریر فوجیوں کو بے عزت کرنے اور انہیں بھگانے کا حکم دیا تھا۔


ਜੇ ਤਿਸੁ ਭਾਵੈ ਦੇ ਵਡਿਆਈ ਜੇ ਭਾਵੈ ਦੇਇ ਸਜਾਇ 
jay tis bhaavai day vadi-aa-ee jay bhaavai day-ay sajaa-ay. ||4||
If it pleases God, He grants glory to His beings; He punishes them if He feels like doing so. ||4||
(ਜੀਵਾਂ ਦੇ ਕੁਝ ਵੱਸ ਨਹੀਂਜੇ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗੇ ਤਾਂ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਵਡਿਆਈਆਦਰ ਦੇਂਦਾ ਹੈਜੇ ਉਸ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਹੋਵੇ ਤਾਂ ਸਜ਼ਾ ਦੇਂਦਾ ਹੈ 
 جے تِسُ بھاۄےَ دے ۄڈِیائیِ جے بھاۄےَ دےءِ سجاءِ 
وڈیائی ۔عظمت (
4)
اگر یہ خدا کو راضی کرتا ہے تو ، وہ اپنے مخلوق کو عظمت عطا کرتا ہے۔ اگر وہ ایسا کرنا پسند کرتا ہے تو وہ انہیں سزا دیتا ہے۔ 


ਅਗੋ ਦੇ ਜੇ ਚੇਤੀਐ ਤਾਂ ਕਾਇਤੁ ਮਿਲੈ ਸਜਾਇ 
ago day jay chaytee-ai taaN kaa-it milai sajaa-ay.
If we remember and perform our duties, then why would we be punished?
ਜੇ ਪਹਿਲਾਂ ਹੀ (ਆਪੋ ਆਪਣੇ ਫ਼ਰਜ਼ ਨੂੰਚੇਤੇ ਕਰਦੇ ਰਹੀਏ (ਚੇਤੇ ਰੱਖੀਏਤਾਂ (ਅਜੇਹੀਸਜ਼ਾ ਕਿਉਂ ਮਿਲੇ?
 اگو دے جے چیتیِئےَ تاں کائِتُ مِلےَ سجاءِ 
اگو۔ اگر پہلے ۔ چیتیئے ۔ یاد کریں۔ کایت۔ کیؤں۔
اگر ہم اپنے فرائض کو یاد رکھیں اور نبھائیں تو ہمیں سزا کیوں دی جائے گی؟


ਸਾਹਾਂ ਸੁਰਤਿ ਗਵਾਈਆ ਰੰਗਿ ਤਮਾਸੈ ਚਾਇ 
saahaaN surat gavaa-ee-aa rang tamaasai chaa-ay.
Engrossed in sensual pleasures and revelries, the Pathan kings had lost their minds and had forgotten their duties to defend their kingdoms.
(ਇਥੋਂ ਦੇਹਾਕਮਾਂ ਨੇ ਐਸ਼ ਵਿਚਤਮਾਸ਼ਿਆਂ ਦੇ ਚਾਅ ਵਿਚ ਆਪਣਾ ਫ਼ਰਜ਼ ਭੁਲਾ ਦਿੱਤਾ ਸੀ
 ساہاں سُرتِ گۄائیِیا رنّگِ تماسےَ چاءِ 
ساہاں۔ شاہاں ۔ بادشاہاں ۔ حکمراناں ۔ سرت۔ ہوش۔ رنگ۔ تماشے ۔ کھیلوں اور تماشوں کے پریم میں ۔ چائے خوشی میں۔
جنسی خوشیوں اور خوشیوں میں مبتلا ، پٹھان بادشاہ اپنا دماغ کھو بیٹھے تھے اور اپنی بادشاہت کا دفاع کرنے کے فرائض بھول چکے تھے۔


ਬਾਬਰਵਾਣੀ ਫਿਰਿ ਗਈ ਕੁਇਰੁ  ਰੋਟੀ ਖਾਇ 
baabarvaanee fir ga-ee ku-ir na rotee khaa-ay. ||5||
Since Babar’s rule has been proclaimed, even a prince has no food to eat. ||5|| ਹੁਣ ਜਦੋਂ ਬਾਬਰ ਦੀ ਦੁਹਾਈਫਿਰੀ ਹੈ ਤਾਂ ਕੋਈ ਪਠਾਣਸ਼ਾਹਜ਼ਾਦਾ ਭੀ ਕਿਤੋਂ ਮੰਗਪਿੰਨ ਕੇ ਰੋਟੀ ਨਹੀਂ ਖਾ ਸਕਦਾ 
 بابرۄانھیِ پھِرِ گئیِ کُئِرُ ن روٹیِ کھاءِ 
باہروانی ۔ باہر کا حملہ ۔ کوئیر۔ شہزادے (
5)
چونکہ بابر کی حکمرانی کا اعلان کیا گیا ہے ، یہاں تک کہ ایک شہزادہ کے پاس کھانے کے لئے بھی کھانا نہیں ہے۔


ਇਕਨਾ ਵਖਤ ਖੁਆਈਅਹਿ ਇਕਨ੍ਹ੍ਹਾ ਪੂਜਾ ਜਾਇ 
iknaa vakhat khu-aa-ee-ah iknHaa poojaa jaa-ay.
Some (the Muslims) have lost their five times of daily prayer and some (the Hindus) have lost their worship as well.
ਮੁਸਲਮਾਨੀਆਂ ਦੇ ਨਿਮਾਜ਼ ਦੇ ਵਕਤ ਖੁੰਝ ਰਹੇ ਹਨਹਿੰਦਵਾਣੀਆਂ ਦਾ ਪੂਜਾ ਦਾ ਸਮਾ ਜਾ ਰਿਹਾ ਹੈ,
 اِکنا ۄکھت کھُیائیِئہِ اِکن٘ہ٘ہا پوُجا جاءِ 
دکھت۔ کھوآئیہہ۔ نماز کا وقت جا رہا ہے ۔ انکاں پوجائے ۔ ایک کا پرستش کا ۔
کچھ (مسلمان) روزانہ کی نماز کے پانچ وقت کھو چکے ہیں اور کچھ (ہندو) اپنی عبادت سے بھی محروم ہوگئے ہیں۔


ਚਉਕੇ ਵਿਣੁ ਹਿੰਦਵਾਣੀਆ ਕਿਉ ਟਿਕੇ ਕਢਹਿ ਨਾਇ 
cha-ukay vin hindvaanee-aa ki-o tikay kadheh naa-ay.
Now the Hindu women can neither bathe and apply the ceremonial marks to their foreheads nor they have their sacred kitchens
ਹੁਣ ਹਿੰਦੁ ਤ੍ਰੀਮਤਾ ਨਾਹ ਇਸ਼ਨਾਨ ਕਰ ਕੇ ਟਿੱਕੇ ਲਾ ਸਕਦੀਆਂ ਹਨਨਾਹ ਹੀ ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਸੁੱਚੇ ਚੌਕੇ ਰਹਿ ਗਏ ਹਨ
 چئُکے ۄِنھُ ہِنّدۄانھیِیا کِءُ ٹِکے کڈھہِ ناءِ 
چوؤ کے ۔ رسوئی ۔ باورچی خانہ ۔ ٹکے کڈھے ۔ نائے ۔ بعد غسل کرکے ٹیکا لگاتے تھے ۔
اب ہندو خواتین نہ تو غسل کرسکتی ہیں اور نہ ہی ان کے ماتھے پر رسمی نشانات لگاسکتی ہیں اور نہ ہی ان کے مقدس کچن ہیں 


ਰਾਮੁ  ਕਬਹੂ ਚੇਤਿਓ ਹੁਣਿ ਕਹਣਿ  ਮਿਲੈ ਖੁਦਾਇ 
raam na kabhoo chayti-o hun kahan na milai khudaa-ay. ||6||
They never remembered god Raam and now to please the barbaric soldiers they cannot even chant Khudaa||6||
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੇ ਕਦੇ ਰਾਮ ਨੂੰ ਚੇਤੇ ਨਹੀਂ ਸੀ ਕੀਤਾਹੁਣ ਜ਼ਾਲਮ ਸਿਪਾਹੀਆਂ ਨੂੰ ਖੁਸ਼ ਕਰਨ ਵਾਸਤੇ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਖ਼ੁਦਾ ਭੀ ਆਖਣਾ ਨਹੀਂ ਮਿਲਦਾ 
 رامُ ن کبہوُ چیتِئو ہُنھِ کہنھِ ن مِلےَ کھُداءِ 
رام نہ کبہو چیتو ۔ خدا کو کبھی یاد نہ کیا۔ ہن کہن ۔ نہ سلے ۔ خدا ۔ ابد خدا کہنا بھی نہیں ملتا ۔ (
6)
وہ خدا کو یاد کبھی نہیں کی اور اب وحشیانہ فوجیوں وہ کر سکتے ہیں بھی نہیں منتر خوش کرنے سے


ਇਕਿ ਘਰਿ ਆਵਹਿ ਆਪਣੈ ਇਕਿ ਮਿਲਿ ਮਿਲਿ ਪੁਛਹਿ ਸੁਖ 
 ik ghar aavahi aapnai ik mil mil puchheh sukh.
 Some have returned to their homes, and meeting their relatives, they ask about their welfare.
ਕੋਈ ਵਿਰਲੇ ਵਿਰਲੇ ਮਨੁੱਖ ਬਚ ਕੇ ਆਪੋ ਆਪਣੇ ਘਰ ਵਿਚ ਆਉਂਦੇ ਹਨਉਹ ਇਕ ਦੂਜੇ ਨੂੰ ਮਿਲ ਮਿਲ ਕੇ ਇਕ ਦੂਜੇ ਦੀ ਸੁਖਸਾਂਦ ਪੁਛਦੇ ਹਨ
 اِکِ گھرِ آۄہِ آپنھےَ اِکِ مِلِ مِلِ پُچھہِ سُکھ 
سکھ۔ خیرئیت ۔
کچھ اپنے گھروں کو لوٹ گئے ہیں ، اور اپنے لواحقین سے مل کر ان کی فلاح و بہبود کے بارے میں پوچھتے ہیں۔


ਇਕਨ੍ਹ੍ਹਾ ਏਹੋ ਲਿਖਿਆ ਬਹਿ ਬਹਿ ਰੋਵਹਿ ਦੁਖ 
iknHaa ayho likhi-aa bahi bahi rove
For some, it is preordained to sit together and discuss their sufferings.
ਕਈਆਂ ਦੀ ਕਿਸਮਤ ਵਿੱਚ ਏਹੋ ਕੁੱਛ ਲਿਖਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈਕਿ ਤਕਲੀਫ ਵਿੱਚ ਬੈਠ ਕੇ ਉਹ ਰੋਂਦੇ ਰਹਿਣ
 اِکن٘ہ٘ہا ایہو لِکھِیا بہِ بہِ روۄہِ دُکھ 
اکناں ۔ ایہو لکھیا۔ ایک کی قسمت میں یہی تحریر تھا۔ بہہ بہہ رودیہہ دکھ کہ اپنے عذاب کے لئے بیٹھ کر روتے رہو۔
کچھ لوگوں کے مل بیٹھ کر ان کی پریشانیوں پر تبادلہ خیال کرنے کا مقدم ہے 


ਜੋ ਤਿਸੁ ਭਾਵੈ ਸੋ ਥੀਐ ਨਾਨਕ ਕਿਆ ਮਾਨੁਖ ੧੧
jo tis bhaavai so thee-ai naanak ki-aa maanukh. ||7||11||
O’ Nanak, whatever pleases God, comes to pass; what can the helpless human beings do? ||7||11||
ਹੇ ਨਾਨਕ!ਉਹੀ ਕੁਝ ਵਾਪਰਦਾ ਹੈ ਜੋ ਉਸ (ਸਿਰਜਣਹਾਰ ਕਰਤਾਰਨੂੰ ਭਾਉਂਦਾ ਹੈਮਨੁੱਖ ਵਿਚਾਰੇ ਕੀ ਕਰਨ ਜੋਗੇ ਹਨ੧੧
 جو تِسُ بھاۄےَ سو تھیِئےَ نانک کِیا مانُکھ ੧੧
اے نانک ، جو کچھ خدا کو راضی کرتا ہے ، وہ آجاتا ہے۔ لاچار انسان کیا کرسکتا ہے؟ 


ਆਸਾ ਮਹਲਾ  
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
 آسا مہلا 
راگ آسا ، پہلا گرو:
ਕਹਾ ਸੁ ਖੇਲ ਤਬੇਲਾ ਘੋੜੇ ਕਹਾ ਭੇਰੀ ਸਹਨਾਈ 
kahaa so khayl tabaylaa ghorhay kahaa bhayree sehnaa-ee.
Where are those sports, stables, horses, drums and the flutes?
ਕਿੱਥੇ ਹਨ (ਫ਼ੌਜੀਆਂ ਦੇਖੇਡ ਤਮਾਸ਼ੇਕਿੱਥੇ ਹਨ ਘੋੜੇ ਤੇ (ਘੋੜਿਆਂ ਦੇਤਬੇਲੇਕਿੱਥੇ ਗਏ ਨਗਾਰੇ ਤੇ ਤੂਤੀਆਂ?
 کہا سُ کھیل تبیلا گھوڑے کہا بھیریِ سہنائیِ 
تیسلے ۔ گھوڑوں والا مکان ۔ بھیری ۔ نقارے ۔ شہنائی ۔ لفیری ۔
وہ کھیل ، استبل ، گھوڑے ، ڈھول اور بانسری کہاں ہیں؟


ਕਹਾ ਸੁ ਤੇਗਬੰਦ ਗਾਡੇਰੜਿ ਕਹਾ ਸੁ ਲਾਲ ਕਵਾਈ 
kahaa so taygband gaadayrarh kahaa so laal kavaa-ee.
Where are the sword-belts and chariots? Where are those scarlet uniforms?
ਕਿੱਥੇ ਹਨ ਪਸ਼ਮੀਨੇ ਦੇ ਗਾਤਰੇਤੇ ਕਿੱਥੇ ਹਨ ਉਹ (ਫ਼ੌਜੀਆਂ ਦੀਆਂਲਾਲ ਬਰਦੀਆਂ?
 کہا سُ تیگبنّد گاڈیرڑِ کہا سُ لال کۄائیِ 
تیغ ۔ بند ۔ شمشیر ۔ لٹکانے والا گاترا۔ گاڈیرڑ۔ رتھ جنگی ۔ لال کوائی ۔ سرخ چوغے ۔ پشمینے کے چوغے ۔
تلوار بیلٹ اور رتھ کہاں ہیں؟ وہ سرخ رنگ کی وردی کہاں ہیں؟ 


ਕਹਾ ਸੁ ਆਰਸੀਆ ਮੁਹ ਬੰਕੇ ਐਥੈ ਦਿਸਹਿ ਨਾਹੀ 
kahaa so aarsee-aa muh bankay aithai diseh naahee. ||1||
Where are the mirrors and the beautiful faces? none of those are visible here. |1|
ਕਿੱਥੇ ਹਨ ਸ਼ੀਸ਼ੇਤੇ (ਸ਼ੀਸ਼ਿਆਂ ਵਿਚੋਂ ਵੇਖੇ ਜਾਣ ਵਾਲੇਸੋਹਣੇ ਮੂੰਹਅੱਜ ਇਥੇ ਕਿਤੇ ਨਹੀਂ ਦਿੱਸਦੇ
 کہا سُ آرسیِیا مُہ بنّکےَ ایَتھےَ دِسہِ ناہیِ 
آرسیا۔ شیشے ۔ موہ ہننکے ۔ خوبصورت چہرے ۔ ایتھے وسے ناہی یہاں۔ دکھائی نہیں دیتے ۔
آئینے اور خوبصورت چہرے کہاں ہیں؟ ان میں سے کوئی بھی یہاں نظر نہیں آتا ہے۔ 


ਇਹੁ ਜਗੁ ਤੇਰਾ ਤੂ ਗੋਸਾਈ 
 ih jag tayraa too gosaa-ee.
 O’ God, this world belongs to You and You are its Master.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਇਹ ਜਗਤ ਤੇਰਾ ਹੈਤੂੰ ਇਸ ਜਗਤ ਦਾ ਮਾਲਕ ਹੈਂ
 اِہُ جگُ تیرا توُ گوسائیِ 
گوسائی۔ مالک ۔ زیر ۔سونا ۔ دؤلت ۔
اے خدا ، یہ دنیا آپ کی ہے اور آپ ہی اس کے مالک ہیں۔


ਏਕ ਘੜੀ ਮਹਿ ਥਾਪਿ ਉਥਾਪੇ ਜਰੁ ਵੰਡਿ ਦੇਵੈ ਭਾਂਈ  ਰਹਾਉ 
ayk gharhee meh thaap uthaapay jar vand dayvai bhaaN-ee. ||1|| rahaa-o.
In an instant, You create and destroy the creation; You distribute the worldly wealth as it pleases You. ||1||Pause||
ਇਕ ਘੜੀ ਵਿਚ ਤੂੰ ਜਗਤ ਰਚ ਕੇ ਤਬਾਹ ਭੀ ਕਰ ਦੇਂਦਾ ਹੈਜਿਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਤੈਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈਤੂੰ ਧਨਦੌਲਤ ਨੂੰ ਵੰਡਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 ایک گھڑیِ مہِ تھاپِ اُتھاپے جرُ ۄنّڈِ دیۄےَ بھاںئیِ  رہاءُ 
تھاپ اُٹھاپے ۔ پیدا ۔ کرکے مٹا وے (
1)رہاؤ۔
ایک لمحے میں ، آپ تخلیق کو تخلیق اور تباہ کردیتے ہیں۔ تم دنیاوی دولت کو جس طرح چاہو تقسیم کرو۔ 


ਕਹਾਂ ਸੁ ਘਰ ਦਰ ਮੰਡਪ ਮਹਲਾ ਕਹਾ ਸੁ ਬੰਕ ਸਰਾਈ 
kahaaN so ghar dar mandap mehlaa kahaa so bank saraa-ee.
Where are those houses, gates, mansions, palaces, and magnificent inns?
ਕਿੱਥੇ ਹਨ ਉਹ ਸੋਹਣੇ ਘਰ ਮਹਲਮਾੜੀਆਂ ਤੇ ਸੋਹਣੀਆਂ ਸਰਾਵਾਂ?
 کہاں سُ گھر در منّڈپ مہلا کہا سُ بنّک سرائیِ 
منڈپ ۔ شامیانے ۔ گھر در۔ گھر اور دروازے ۔ وہلیز۔ ایتھے یہاں۔ بنک سرائی ۔ خوبصورت مسافروں کے لئے سرائیں۔
وہ مکانات ، دروازے ، حویلی ، محلات اور عمدہ کہاں ہیں؟ 


ਕਹਾਂ ਸੁ ਸੇਜ ਸੁਖਾਲੀ ਕਾਮਣਿ ਜਿਸੁ ਵੇਖਿ ਨੀਦ  ਪਾਈ 
kahaaN so sayj sukhaalee kaaman jis vaykh need na paa-ee.
Where is that pleasing woman and her cozy bed whose beauty would not allow one to sleep?
ਕਿੱਥੇ ਹੈ ਉਹ ਸੁਖ ਦੇਣ ਵਾਲੀ ਇਸਤ੍ਰੀ ਤੇ ਉਸ ਦੀ ਸੇਜਜਿਸ ਨੂੰ ਵੇਖ ਕੇ (ਅੱਖਾਂ ਵਿਚੋਂਨੀਂਦ ਮੁੱਕ ਜਾਂਦੀ ਸੀ?
 کہاں سُ سیج سُکھالیِ کامنھِ جِسُ ۄیکھِ نیِد ن پائیِ 
سیج سکھالی ۔ اچھی خوابگاہ ۔ کامن۔ عورتن ۔
وہ خوش کن عورت اور اس کا آرام دہ بستر کہاں ہے جس کی خوبصورتی کسی کو سونے نہیں دیتی ہے؟


ਕਹਾ ਸੁ ਪਾਨ ਤੰਬੋਲੀ ਹਰਮਾ ਹੋਈਆ ਛਾਈ ਮਾਈ 
kahaa so paan tambolee harmaa ho-ee-aa chhaa-ee maa-ee. ||2||
Where are those betel leaves and their sellers? Where are those ladies living in harems? They all have vanished like a shadow. ||2||
ਕਿੱਥੇ ਹਨ ਉਹ ਪਾਨ ਤੇ ਪਾਨ ਵੇਚਣ ਵਾਲੀਆਂਤੇ ਕਿੱਥੇ ਉਹ ਪਰਦੇਦਾਰ ਜ਼ਨਾਨੀਆਂਸਭ ਗੁੰਮ ਹੋ ਚੁਕੀਆਂ ਹਨ 
 کہا سُ پان تنّبولیِ ہرما ہوئیِیا چھائیِ مائیِ 
تنبولی ۔ پان فروخت کرنے والیاں۔ حرما۔ پردیدار۔ عورتیں۔ چھائی مائی ۔ سایہ کی طرح غائب ۔(
1)
وہ کھجلی کے پتے اور ان کے بیچنے والے کہاں ہیں؟ حرمیں رہنے والی وہ خواتین کہاں ہیں؟ وہ سب سائے کی طرح غائب ہوگئے ہیں۔ 


ਇਸੁ ਜਰ ਕਾਰਣਿ ਘਣੀ ਵਿਗੁਤੀ ਇਨਿ ਜਰ ਘਣੀ ਖੁਆਈ 
is jar kaaran ghanee vigutee in jar ghanee khu-aa-ee.
For the sake of this worldly wealth, so many are ruined and this wealth has disgraced much of the world.
ਇਸ ਧਨ ਦੀ ਖ਼ਾਤਰ ਬਹੁਤ ਲੋਕਾਈ ਤਬਾਹ ਹੁੰਦੀ ਹੈ ਇਸ ਧਨ ਨੇ ਬਹੁਤ ਦੁਨੀਆ ਨੂੰ ਖ਼ੁਆਰ ਕੀਤਾ ਹੈ
 اِسُ جر کارنھِ گھنھیِ ۄِگُتیِ اِنِ جر گھنھیِ کھُیائیِ 
زر۔ سونا دؤلت ۔ کارن ۔ کی وجہ سے دگوتی ۔ خوار ہوئی ۔ کھوآئی ۔ غلط راستے ڈالی ۔ کھؤ آئے ۔ غلط راستے ڈالے ۔ گمراہ ۔
اس دنیاوی دولت کی خاطر ، بہت سارے برباد ہوئے اور اس دولت نے دنیا کی بیشتر بدنامی کی ہے۔ 


ਪਾਪਾ ਬਾਝਹੁ ਹੋਵੈ ਨਾਹੀ ਮੁਇਆ ਸਾਥਿ  ਜਾਈ 
paapaa baajhahu hovai naahee mu-i-aa saath na jaa-ee.
This wealth cannot be amassed without committing sins and it does not go along with the dead.
ਪਾਪ ਜ਼ੁਲਮ ਕਰਨ ਤੋਂ ਬਿਨਾਇਹ ਦੌਲਤ ਇਕੱਠੀ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦੀਤੇ ਮਰਨ ਵੇਲੇ ਇਹ (ਇਕੱਠੀ ਕਰਨ ਵਾਲੇ ਦੇਨਾਲ ਨਹੀਂ ਜਾਂਦੀ
 پاپا باجھہُ ہوۄےَ ناہیِ مُئِیا ساتھِ ن جائیِ 
اس دولت کو گناہ کیے بغیر اکٹھا نہیں کیا جاسکتا اور وہ مردوں کے ساتھ نہیں جاتا۔


ਜਿਸ ਨੋ ਆਪਿ ਖੁਆਏ ਕਰਤਾ ਖੁਸਿ ਲਏ ਚੰਗਿਆਈ 
jis no aap khu-aa-ay kartaa khus la-ay changi-aa-ee. ||3||
Whom God Himself wants to go astray, He first deprives that person of his virtues. ||3||
ਪਰਮਾਤਮਾ ਜਿਸ ਨੂੰ ਆਪ ਕੁਰਾਹੇ ਪਾਂਦਾ ਹੈ (ਪਹਿਲਾਂ ਉਸ ਪਾਸੋਂ ਉਸ ਦੀਚੰਗਿਆਈ ਖੋਹ ਲੈਂਦਾ ਹੈ 
 جِس نو آپِ کھُیاۓ کرتا کھُسِ لۓ چنّگِیائیِ 
کھس ہے چنگیائی ۔ اُسے نکی اچھائی چھین لیتا ہے ۔ (
3)
جسے خدا خود گمراہ کرنا چاہتا ہے ، وہ پہلے اس شخص کو اپنی خوبیوں سے محروم کرتا ہے۔ 


ਕੋਟੀ ਹੂ ਪੀਰ ਵਰਜਿ ਰਹਾਏ ਜਾ ਮੀਰੁ ਸੁਣਿਆ ਧਾਇਆ 
kotee hoo peer varaj rahaa-ay jaa meer suni-aa Dhaa-i-aa.
When Pathan rulers heard about the emperor Babar’s invasion, many muslim saints were forbidden to go anywhere to ward off the invader with prayers.
ਜਦੋਂ ਪਠਾਣ ਹਾਕਮਾਂ ਨੇ ਸੁਣਿਆ ਕਿ ਮੀਰ ਬਾਬਰ ਹੱਲਾ ਕਰਨ  ਰਿਹਾ ਹੈਤਾਂ ਅਨੇਕਾਂ ਹੀ ਪੀਰਾਂ ਨੂੰ ਜਾਦੂ ਟੂਣੇ ਕਰਨ ਲਈ ਰੋਕ ਰੱਖਿਆ
 کوٹیِ ہوُ پیِر ۄرجِ رہاۓ جا میِرُ سُنھِیا دھائِیا 
جامیرسنیا دھیا یئیا ۔ جب باہر کے حملے کی خبر سنی ۔ کروڑوں ہی بزروں کو گنڈے تعویز کروان کے لئے تسبیح پھیرنے کے لئے روک رکھا۔
جب پٹھان حکمرانوں نے شہنشاہ بابر کے حملے کے بارے میں سنا تو بہت سے مسلمان سنتوں کو نماز کے ساتھ حملہ آور کو روکنے کے لئے کہیں بھی جانے سے منع کیا گیا تھا۔