Urdu-Page-412

SGGS Page 412
ਜੋ ਤਿਸੁ ਭਾਵੈ ਸੋ ਫੁਨਿ ਹੋਇ 
jo tis bhaavai so fun ho-ay.
Whatever pleases Him, comes to pass.
ਜਗਤ ਵਿਚ ਉਹੀ ਕੁਝ ਹੋ ਰਿਹਾ ਹੈ ਜੋ ਉਸ ਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ
جو تِسُ بھاۄےَ سو پھُنِ ہوءِ 
تِسُ بھاۄےَ ۔جو تجھے پسند ہے
 وہ جو چاہتاہے وہی کرتا ہے


ਸੁਣਿ ਭਰਥਰਿ ਨਾਨਕੁ ਕਹੈ ਬੀਚਾਰੁ 
sun bharthar naanak kahai beechaar.
O’ Bharthari Yogi, listen, after due deliberation Nanak says this,
ਹੇ ਭਰਥਰੀ ਜੋਗੀਸੁਣਨਾਨਕ ਤੈਨੂੰ ਇਹ ਵਿਚਾਰ ਦੀ ਗੱਲ ਦੱਸਦਾ ਹੈ,
سُنھِ بھرتھرِ نانکُ کہےَ بیِچارُ 
بھرتھری یوگی ، سنو ، غور و فکر کے بعد نانک یہ کہتے ہیں


ਨਿਰਮਲ ਨਾਮੁ ਮੇਰਾ ਆਧਾਰੁ 
nirmal naam mayraa aaDhaar. ||8||1||
that the Immaculate Name of God is my only Support in life. ||8||1||
ਉਸ (ਸਰਬਵਿਆਪਕਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਪਵਿਤ੍ਰ ਨਾਮ ਮੇਰੀ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦਾ ਆਸਰਾ ਹੈ 
 نِرمل نامُ میرا آدھارُ ੮॥੧॥
نرمل۔ پاک
کہ خدا کا پاک نام زندگی میں میرا واحد سہارا ہے


ਆਸਾ ਮਹਲਾ  
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
ਸਭਿ ਜਪ ਸਭਿ ਤਪ ਸਭ ਚਤੁਰਾਈ 
sabh jap sabh tap sabh chaturaa-ee.
Even if one is performing all kinds of worship and penance, and shows all kinds of cleverness,
ਮਨੁੱਖ ਸਾਰੇ ਜਪ ਕਰਦਾ ਹੈ ਸਾਰੇ ਤਪ ਸਾਧਦਾ ਹੈ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਆਦਿਕ ਸਮਝਣ ਬਾਰੇ ਹਰੇਕ ਕਿਸਮ ਦੀ ਸਿਆਣਪਅਕਲ ਭੀ ਵਿਖਾਂਦਾ ਹੈ,
 سبھِ جپ سبھِ تپ سبھ چتُرائیِ 
 جپ ریاض۔ تپ۔ تپسیا۔ جسمانی ۔ کوفت برائے ملاپ خدا۔ چترائی ۔ ہوشیاری ۔
یہاں تک کہ اگر کوئی ہر طرح کی عبادت اور توبہ کررہا ہے ، اور ہر قسم کی ہوشیاری کا مظاہرہ کرتا ہے

 
ਊਝੜਿ ਭਰਮੈ ਰਾਹਿ  ਪਾਈ 
oojharh bharmai raahi na paa-ee.
yet, he is not on the right path in life and instead is wandering in the wilderness.
ਉਹ ਗ਼ਲਤ ਰਸਤੇ ਤੇ ਭਟਕ ਰਿਹਾ ਹੈਉਹ ਸਹੀ ਰਸਤੇ ਉੱਤੇ ਨਹੀਂ ਜਾ ਰਿਹਾ
 اوُجھڑِ بھرمےَ راہِ ن پائیِ 
اوجھڑ۔ غلط راستے۔ بھرے بھٹکنا ۔ بوجھے سمجھے
پھر بھی ، وہ زندگی میں سیدھے راستے پر نہیں ہے اور اس کے بجائےبیابان میں بھٹک رہا ہے


ਬਿਨੁ ਬੂਝੇ ਕੋ ਥਾਇ  ਪਾਈ 
bin boojhay ko thaa-ay na paa-ee.
Without understanding the righteous way of living, all his efforts are worthless and he is not approved in God’s court.
ਪਰ ਜੇ ਉਹ (ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਦਾਸ ਬਣਨ ਦੀ ਜੁਗਤਿਨਹੀਂ ਸਮਝਦਾਤਾਂ ਉਸ ਦਾ (ਜਪ ਤਪ ਆਦਿਕ ਦਾਕੋਈ ਭੀ ਉੱਦਮ (ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਹਜ਼ੂਰੀ ਵਿਚਪਰਵਾਨ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ
 بِنُ بوُجھے کو تھاءِ ن پائیِ 
بِنُ بوُجھے ۔بغیر سمجھے
راستبازی کی زندگی کو سمجھے بغیر ، اس کی ساری کوششیں بے سود ہیں اور وہ خدا کے دربار میں منظور نہیں ہے


ਨਾਮ ਬਿਹੂਣੈ ਮਾਥੇ ਛਾਈ 
 naam bihoonai maathay chhaa-ee. ||1||
Without the wealth of Naam, he is disgraced in God’s court. ||1||
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਤੋਂ ਸੱਖਣੇ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਸਿਰ ਸੁਆਹ ਹੀ ਪੈਂਦੀ ਹੈ 
 نام بِہوُنھےَ ماتھے چھائیِ ੧॥
 ۔ بہوئے ۔ سچ اور حقیقت کے بغیر ۔ ماتھے چھائی ۔ کالخ سوآہ 
نام کی دولت کے بغیر وہ خدا کے دربار میں منہ کالا کرواتا ہے


ਸਾਚ ਧਣੀ ਜਗੁ ਆਇ ਬਿਨਾਸਾ 
saach Dhanee jag aa-ay binaasaa.
The world continues to be created and destroyed but the Creator is eternal.
ਜਗਤ ਜੰਮਦਾ ਮਰਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈਪਰ ਜਗਤ ਦਾ ਮਾਲਕ ਪ੍ਰਭੂ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਹੈ
 ساچ دھنھیِ جگُ آءِ بِناسا 
سچا دھنی سچا مالک ۔ ساچ مالک ہے ۔ جگ آئے وناسا۔ عالم میں پیدا ہوتا ہے ختم ہو جاتا ہے
دنیا بنتی اور تباہ ہوتی رہتی ہے لیکن خالق ابدی ہے


ਛੂਟਸਿ ਪ੍ਰਾਣੀ ਗੁਰਮੁਖਿ ਦਾਸਾ  ਰਹਾਉ 
chhootas paraanee gurmukh daasaa. ||1|| rahaa-o.
By following the Guru’s teachings, a devotee of God is saved from the cycles of birth and death. ||1||Pause||
ਜੇਹੜਾ ਪ੍ਰਾਣੀ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਭਗਤ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਉਹ (ਜਨਮ ਮਰਨ ਦੇ ਗੇੜ ਤੋਂਬਚ ਜਾਂਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 چھوُٹسِ پ٘رانھیِ گُرمُکھِ داسا ੧॥ رہاءُ 
چھوٹس پرانی۔ انسان کی نجات گورمکھ داسا۔ مرید مرشد کا خدتمگار ہونے میں ہے ۔
گرو کی تعلیمات پر عمل کرنے سے ، خدا کا عقیدت مند پیدائش اور موت کے چکروں سے نجات پا جاتا ہے


ਜਗੁ ਮੋਹਿ ਬਾਧਾ ਬਹੁਤੀ ਆਸਾ 
jag mohi baaDhaa bahutee aasaa.
The world is bound in emotional attachments and many worldly desires.
ਜਗਤ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਬੱਝਾ ਹੋਇਆ ਬਹੁਤੀਆਂ ਆਸਾਂ ਵਿਚ ਬੱਝਾ ਹੋਇਆ ਹੈ
 جگُ موہِ بادھا بہُتیِ آسا 
دنیا جذباتی وابستگیوں اور بہت ساری دنیاوی خواہشات میں جکڑی ہوئی ہے


ਗੁਰਮਤੀ ਇਕਿ ਭਏ ਉਦਾਸਾ 
gurmatee ik bha-ay udaasaa.
But some remain detached from Maya by following the Guru’s teachings.
ਪਰ ਕਈ (ਵਡਭਾਗੀ ਮਨੁੱਖਗੁਰੂ ਦੀ ਸਿੱਖਿਆ ਤੇ ਤੁਰ ਕੇ ਮੋਹ ਤੋਂ ਨਿਰਲੇਪ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ,
 گُرمتیِ اِکِ بھۓ اُداسا 
 گُرمتیِ ۔گرو کی تعلیمات
لیکن کچھ گرو کی تعلیمات پر عمل کرتے ہوئے مایا سے الگ ہوجاتے ہیں


ਅੰਤਰਿ ਨਾਮੁ ਕਮਲੁ ਪਰਗਾਸਾ 
antar naam kamal pargaasaa.
They realize God dwelling within and they remains delighted like a lotus.
ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਅੰਦਰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਵੱਸਦਾ ਹੈ (ਜਿਸ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਉਹਨਾਂ ਦਾ ਹਿਰਦਾ-) ਕਮਲ ਖਿੜਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 انّترِ نامُ کملُ پرگاسا 
انتر نام۔ دل میں سچائی حقیقت ۔ کنول پرگاسا۔ دل کھلتا ہے ۔ خوشی ملتی ہے ۔ تراسا۔ خوف۔ ڈر۔ (2)
انہوں نے خدا کو اپنے اندر بسنے کا احساس کیا اور وہ کمل کی طرح مسرور رہے


ਤਿਨ੍ਹ੍ਹ ਕਉ ਨਾਹੀ ਜਮ ਕੀ ਤ੍ਰਾਸਾ 
tinH ka-o naahee jam kee taraasaa. ||2||
They have no fear of death. ||2|
ਉਨ੍ਹਾਂ ਨੂੰ ਮੌਤ ਦਾ ਕੋਈ ਡਰ ਨਹੀਂ ਰਹਿੰਦਾ 
 تِن٘ہ٘ہ کءُ ناہیِ جم کیِ ت٘راسا ੨॥
 تِن٘ہ٘ہ ۔ انہیں
انہیں موت کا خوف نہیں ہے


 
ਜਗੁ ਤ੍ਰਿਅ ਜਿਤੁ ਕਾਮਣਿ ਹਿਤਕਾਰੀ 
jag tari-a jit kaaman hitkaaree.
The entire humanity is controlled by lust.
ਜਗਤ ਕਾਮਾਤੁਰ ਹੋ ਰਿਹਾ ਹੈਇਸਤ੍ਰੀ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਫਸਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ;
جگُ ت٘رِء جِتُ کامنھِ ہِتکاریِ 
جگہ تریاجت۔ عالم عورت کا فتح کردہ ہے ۔ کامن ہتکاری ۔ عورت سے محبت کرنےوالا۔
ہوس کے ذریعہ پوری انسانیت پر قابو پایا جاتا ہے


ਪੁਤ੍ਰ ਕਲਤ੍ਰ ਲਗਿ ਨਾਮੁ ਵਿਸਾਰੀ 
putar kaltar lag naam visaaree.
Emotionally attached to family, one forsakes Naam.
ਪੁੱਤਰ ਵਹੁਟੀ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਪੈ ਕੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਨੂੰ ਭੁਲਾ ਰਿਹਾ ਹੈ
 پُت٘ر کلت٘ر لگِ نامُ ۄِساریِ 
نام وساری نام بھلاتا ہے ۔ برتھا۔ بیکار۔ بے فائدہ
جو شخص خاندان سے جذباتی طور پر منسلک ہے وہ نام کو ترک کرتا ہے


ਬਿਰਥਾ ਜਨਮੁ ਗਵਾਇਆ ਬਾਜੀ ਹਾਰੀ 
birthaa janam gavaa-i-aa baajee haaree.
Thus wastes human life in vain and loses the game of life.
ਇਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਆਪਣਾ ਜੀਵਨ ਵਿਅਰਥ ਗਵਾਂਦਾ ਹੈ ਤੇ ਮਨੁੱਖਾ ਜਨਮ ਦੀ ਖੇਡ ਹਾਰ ਕੇ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
بِرتھا جنمُ گۄائِیا باجیِ ہاریِ 
۔ جنم زندگی بازی ہاری۔ زندگی کا کھیل ہار گئے ۔
اس طرح انسانی زندگی بیکار ہوجاتی ہے اور زندگی کا کھیل ہار جاتی ہے


ਸਤਿਗੁਰੁ ਸੇਵੇ ਕਰਣੀ ਸਾਰੀ 
satgur sayvay karnee saaree. ||3||
However, one who follows the Guru’s teachings and remembers God, his conduct becomes sublime. ||3||
ਪਰ ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਦੱਸੀ ਸੇਵਾ ਕਰਦਾ ਹੈ ਉਸ ਦਾ ਆਚਰਨ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 ستِگُرُ سیۄے کرنھیِ ساریِ ੩॥
ستگر سیوے ۔ سچے مرشد کی خدمت کرتی ساری ۔ نیک اعمال ہے (3)
تاہم جو گرو کی تعلیمات کی پیروی کرتا ہے اور خدا کو یاد کرتا ہے اس کا طرز عمل عظیم بن جاتا ہے


ਬਾਹਰਹੁ ਹਉਮੈ ਕਹੈ ਕਹਾਏ 
baahrahu ha-umai kahai kahaa-ay.
Even if a Guru’s follower utters some egotistical remarks in public.
ਉਂਞ ਦੁਨੀਆ ਦੀ ਕਿਰਤ ਕਾਰ ਕਰਦਾ ਉਹ ਵੇਖਣ ਨੂੰ ਆਪਾ ਜਤਾਂਦਾ ਹੈ,
 باہرہُ ہئُمےَ کہےَ کہاۓ 
باہر۔ بیرونی طور پر ہونمے ۔ خودی
یہاں تک کہ اگر کسی گرو کے پیروکار عوام میں کچھ مغرورانہ تبصرے کرتے ہیں


ਅੰਦਰਹੁ ਮੁਕਤੁ ਲੇਪੁ ਕਦੇ  ਲਾਏ 
andrahu mukat layp kaday na laa-ay.
But he remains from the effects of Maya and never afflicted by ego.
ਪਰ ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਮਾਇਆ ਦੇ ਪ੍ਰਭਾਵ ਵਿੱਚ ਨਹੀਂ ਪੈਂਦਾ ਤੇ ਅੰਤਰ ਆਤਮੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਤੋਂ ਆਜ਼ਾਦ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ,
 انّدرہُ مُکتُ لیپُ کدے ن لاۓ 
۔ مکت نجات۔ آزادی لیپ۔ لاگ۔ اُثر
لیکن وہ مایا کے اثرات سے باقی ہے اور کبھی انا کا شکار نہیں ہے


ਮਾਇਆ ਮੋਹੁ ਗੁਰ ਸਬਦਿ ਜਲਾਏ 
maa-i-aa moh gur sabad jalaa-ay.
By following the Guru’s word, such a person burns away his love for Maya,
ਜੋ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਵਿਚ (ਜੁੜ ਕੇ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰੋਂਮਾਇਆ ਦਾ ਮੋਹ ਸਾੜ ਦੇਂਦਾ ਹੈ,
 مائِیا موہُ گُر سبدِ جلاۓ 
 
۔ مایئیاموہ۔ دنیاوی دولت کی محبت
گرو کے کلام پر عمل کرنے سے ، ایسا شخص مایا سے اپنی محبت جلا دیتا ہے


ਨਿਰਮਲ ਨਾਮੁ ਸਦ ਹਿਰਦੈ ਧਿਆਏ 
nirmal naam sad hirdai Dhi-aa-ay. ||4||
and always meditates on the Immaculate Naam in his heart ||4||
ਤੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਪਵਿਤ੍ਰ ਨਾਮ ਨੂੰ ਸਦਾ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਯਾਦ ਰੱਖਦਾ ਹੈ 
نِرمل نامُ سد ہِردےَ دھِیاۓ 
۔ گرسبد۔ کلام مرشد ۔ نرمل نام۔ پاک سچائی ۔ صد ہمیشہ ہر دے ۔ دل قلب ۔ دھیائے توجہ دے ۔ (4)
اور ہمیشہ اس کے دل میں پاکیزہ نام پر غور کرتے ہیں


ਧਾਵਤੁ ਰਾਖੈ ਠਾਕਿ ਰਹਾਏ 
 Dhaavat raakhai thaak rahaa-ay.
He restrains his wandering mind and keeps it under control.
ਉਹ ਆਪਣੇ ਭਟਕਦੇ ਮਨ ਦੀ ਰਾਖੀ ਕਰਦਾ ਹੈ (ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਲੋਂਰੋਕ ਕੇ ਰੱਖਦਾ ਹੈ l
 دھاۄتُ راکھےَ ٹھاکِ رہاۓ 
دھاوت راکھے بھٹکتے کو بچائے ۔ ٹھاکر رہا کے ۔ روئے 
وہ اپنے آوارہ دماغ کو روکتا ہے اور اسے قابو میں رکھتاہے


ਸਿਖ ਸੰਗਤਿ ਕਰਮਿ ਮਿਲਾਏ 
 sikh sangat karam milaa-ay.
The company of such a Guru’s disciple is obtained by God’s grace.
ਐਸੇ ਗੁਰਸਿਖ ਦਾ ਮੇਲਮਿਲਾਪ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦੀ ਦਇਆ ਦੁਆਰਾ ਪਰਾਪਤ ਹੁੰਦਾ ਹੈ
 سِکھ سنّگتِ کرمِ مِلاۓ 
سکھ طالب علم۔ سنگت۔ اکٹھ ۔ نیک لوگ۔ کرم بخشش (5)
ایسے گرو کے شاگرد کی صحبت خدا کے فضل سے حاصل کی جاتی ہے


ਗੁਰ ਬਿਨੁ ਭੂਲੋ ਆਵੈ ਜਾਏ 
 gur bin bhoolo aavai jaa-ay.
 Without the Guru’s teachings, one goes astray and continues in the cycle of birth and death.
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਆਉਣ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਮਨੁੱਖ (ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦੇ ਸਹੀ ਰਸਤੇ ਤੋਂਖੁੰਝ ਜਾਂਦਾ ਹੈਤੇ ਜਨਮ ਮਰਨ ਦੇ ਗੇੜ ਵਿਚ ਪੈ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 گُر بِنُ بھوُلو آۄےَ جاۓ 
گرو کی تعلیمات کے بغیر ، کوئی گمراہ ہوجاتا ہے اور پیدائش اور موت کے چکر میں چلتا رہتا ہے


ਨਦਰਿ ਕਰੇ ਸੰਜੋਗਿ ਮਿਲਾਏ 
nadar karay sanjog milaa-ay. ||5||
When God bestows His glance of grace, He brings about a person’s union with the Guru. ||5|
 
ਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂ ਮੇਹਰ ਦੀ ਨਿਗਾਹ ਕਰਦਾ ਹੈਤਾਂ ਉਸ ਨੂੰ ਭੀ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਵਿਚ ਜੋੜ ਦੇਂਦਾ ਹੈ, 
 ندرِ کرے سنّجوگِ مِلاۓ 
 جب خدا اپنے فضل وکرم پر نگاہ ڈالتا ہے ، تو وہ گرو کے ساتھ کسی شخص کا اتحاد پیدا کرتا ہے


ਰੂੜੋ ਕਹਉ  ਕਹਿਆ ਜਾਈ 
roorho kaha-o na kahi-aa jaa-ee.
O’ God, You are beautiful, but I cannot describe how beautiful, You are.
(ਹੇ ਪ੍ਰਭੂ!) ਤੂੰ ਸੁੰਦਰ ਹੈਂਪਰ ਜੇ ਮੈਂ ਦੱਸਣ ਦਾ ਜਤਨ ਕਰਾਂ ਕਿ ਤੂੰ ਕਿਹੋ ਜਿਹਾ ਸੁੰਦਰ ਹੈਂ ਤਾਂ ਦੱਸਿਆ ਨਹੀਂ ਜਾ ਸਕਦਾ
روُڑو کہءُ ن کہِیا جائیِ 
روڑو۔ خوبصورت ۔ کہؤ۔ کہتا ہوں۔
اے خدا تم خوبصورت ہو لیکن میں یہ بیان نہیں کرسکتا کہ آپ کتنے خوبصورت ہیں 


ਅਕਥ ਕਥਉ ਨਹ ਕੀਮਤਿ ਪਾਈ 
akath katha-o nah keemat paa-ee.
O’ God, Your virtues are indescribable; even if I try, I cannot estimate the worth of Your virtues.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਤੇਰੇ ਗੁਣ ਬਿਆਨ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦੇਜੇ ਮੈਂ ਬਿਆਨ ਕਰਨ ਦਾ ਜਤਨ ਕਰਾਂਤਾਂ ਭੀ ਤੇਰੇ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਮੁੱਲ ਨਹੀਂ ਪਾਇਆ ਜਾ ਸਕਦਾ
 اکتھ کتھءُ نہ کیِمتِ پائیِ 
کہؤ۔ کہتا ہوں۔ کتھؤ بیان کرنا۔ اکتھ ۔
اے خدا تیری خوبی ناقابل بیان ہے۔ اگر میں کوشش کروں تو بھی میں آپ کے فضائل کی قیمت کا اندازہ نہیں کرسکتا۔


ਸਭ ਦੁਖ ਤੇਰੇ ਸੂਖ ਰਜਾਈ 
sabh dukh tayray sookh rajaa-ee.
Sorrows turn into pleasures by Your Will.
ਤੇਰੀ ਰਜ਼ਾ ਵਿਚ ਤੁਰਿਆਂ ਸਾਰੇ ਦੁੱਖ ਸੁਖ ਬਣ ਜਾਂਦੇ ਹਨ
 سبھ دُکھ تیرے سوُکھ رجائیِ 
 غم آپ کی مرضی سے خوشیوں میں بدل جاتا ہے


ਸਭਿ ਦੁਖ ਮੇਟੇ ਸਾਚੈ ਨਾਈ 
sabh dukh maytay saachai naa-ee. ||6||
All sorrows are eradicated by meditating on God’s Name. ||6||
ਸਦਾਥਿਰ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਕੀਤਿਆਂ ਸਾਰੇ ਹੀ ਦੁੱਖ ਮਿਟ ਜਾਂਦੇ ਹਨ 
سبھِ دُکھ میٹے ساچےَ نائیِ 
جو بیان نہ ہو سکے ۔ ساچے نائی۔ سچی حقیقت سے ۔ (6)
خدا کے نام پر غور کرنے سے سارے دکھ دور ہوجاتے ہیںv


ਕਰ ਬਿਨੁ ਵਾਜਾ ਪਗ ਬਿਨੁ ਤਾਲਾ 
kar bin vaajaa pag bin taalaa.
One feels such a joy as if a musical instrument is playing within his heart without the use of hands and a dance is being performed without the use of feet,
ਮਨੁੱਖ ਦੀ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਅਜੇਹੀ ਬਣ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਕਿਮਾਨੋਬਿਨਾ ਹੱਥੀਂ ਵਜਾਏ ਵਾਜਾ ਵੱਜਦਾ ਹੈ ਤੇ ਬਿਨਾ ਪੈਰੀਂ ਨੱਚਿਆਂ ਤਾਲ ਪੂਰੀਦਾ ਹੈ
کر بِنُ ۄاجا پگ بِنُ تالا 
 
کر ۔ ہاتھ ۔ بن بغیر پگ۔ پاوں ۔ نحالا ۔خوشی ۔
کسی کو اس طرح کی خوشی محسوس ہوتی ہے جیسے جیسے کوئی آلات موسیقی اس کے دل میں ہاتھوں کے استعمال کیے بغیر کھیل رہا ہو اور پیروں کے استعمال کے بغیر ہی کوئی رقص پیش کیا جا رہا ہو,


ਜੇ ਸਬਦੁ ਬੁਝੈ ਤਾ ਸਚੁ ਨਿਹਾਲਾ 
jay sabad bujhai taa sach nihaalaa.
if he realizes God dwelling within him by understanding the Guru’s Word.
ਜਦੋਂ ਉਹ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਨੂੰ ਸਮਝ ਕੇ ਉਹ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰ ਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਦੀਦਾਰ ਕਰ ਲਵੇ
جے سبدُ بُجھےَ تا سچُ نِہالا 
اگر اسے اس بات کا احساس ہوجائے کہ وہ گرو کے کلام کو سمجھ کر اپنے اندر خدا کی ذات میں آباد ہے


ਅੰਤਰਿ ਸਾਚੁ ਸਭੇ ਸੁਖ ਨਾਲਾ 
antar saach sabhay sukh naalaa.
With the realization of God within, that person feels blissful,
ਉਸ ਦੇ ਅੰਦਰ ਉਹ ਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂ ਪਰਗਟ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈਉਸ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਅੰਤਰ ਆਤਮੇ ਸੁਖ ਹੀ ਸੁਖ ਪ੍ਰਤੀਤ ਹੁੰਦੇ ਹਨ
 انّترِ ساچُ سبھے سُکھ نالا 
اپنے اندر خدا کے ادراک کے ساتھ ، وہ شخص خوشی محسوس کرتا ہے


ਨਦਰਿ ਕਰੇ ਰਾਖੈ ਰਖਵਾਲਾ 
nadar karay raakhai rakhvaalaa. ||7||
When the Savior God shows His glance of grace, He saves the person from worldly afflictions. ||7||
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਰੱਖਣਹਾਰ ਪ੍ਰਭੂ ਮੇਹਰ ਦੀ ਨਜ਼ਰ ਕਰ ਕੇ (ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਤੋਂਬਚਾਂਦਾ ਹੈ 
 ندرِ کرے راکھےَ رکھۄالا ੭॥
ندر۔ نطر عنایت و شفقت (7)
جب نجات دہندہ خدا اپنا فضل و کرم دکھاتا ہے ، تو وہ انسان کو دنیاوی تکالیف سے بچاتا ہے


ਤ੍ਰਿਭਵਣ ਸੂਝੈ ਆਪੁ ਗਵਾਵੈ 
taribhavan soojhai aap gavaavai.
One who sheds self-conceit is able to realize God everywhere.
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਆਪਾਭਾਵ ਦੂਰ ਕਰਦਾ ਹੈਉਸ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਤਿੰਨਾਂ ਭਵਨਾਂ ਵਿਚ ਵੱਸਦਾ ਦਿੱਸ ਪੈਂਦਾ ਹੈ,
 ت٘رِبھۄنھ سوُجھےَ آپُ گۄاۄےَ 
تربھون۔ تینو عالم۔ سوجھے پتہ چلتا ہے ۔ علم ہوتا ہے ۔
جو خود غرضی کا مظاہرہ کرتا ہے وہ ہر جگہ خدا کو محسوس کرنے کے قابل ہوتا ہے


ਬਾਣੀ ਬੂਝੈ ਸਚਿ ਸਮਾਵੈ 
banee boojhai sach samaavai.
He understands the Guru’s word and merges in the eternal God.
ਉਹ ਗੁਰੂ ਦੀ ਬਾਣੀ ਨੂੰ ਸਮਝਦਾ ਹੈਤੇ ਸੱਚੇ ਪ੍ਰਭੂ ਵਿਚ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 بانھیِ بوُجھےَ سچِ سماۄےَ 
آپ خودی ہونمے ۔ بانی کلام۔ سچ سماے ۔ حقیقت اپنائے ۔
وہ گرو کے کلام کو سمجھتا ہے اور ابدی خدا میں ضم ہوجاتا ہے


ਸਬਦੁ ਵੀਚਾਰੇ ਏਕ ਲਿਵ ਤਾਰਾ 
sabad veechaaray ayk liv taaraa.
Reflecting on the Guru’s word that person keeps attuned to God alone.
ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਸੋਚਮੰਡਲ ਵਿਚ ਟਿਕਾਈ ਰੱਖਦਾ ਹੈਇਕਰਸ ਸੁਰਤਿ ਪ੍ਰਭੂ ਵਿਚ ਜੋੜਦਾ ਹੈ
 سبدُ ۄیِچارے ایک لِۄ تارا 
گرو کے کلام پر غور کرتے ہوئے کہ وہ شخص صرف اور صرف خدا سے مطابقت رکھتا ہے


ਨਾਨਕ ਧੰਨੁ ਸਵਾਰਣਹਾਰਾ 
naanak Dhan savaaranhaaraa. ||8||2||
O’ Nanak, great is God, the embellisher of human beings. ||8||2||
ਹੇ ਨਾਨਕਮੁਬਾਰਕ ਹੈਪ੍ਰਾਣੀ ਨੂੰ ਸਸ਼ੋਭਤ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਸੁਆਮੀ 
 نانک دھنّنُ سۄارنھہارا ੮॥੨॥ 
اے نانک انسانوں کا زیور خدا عظیم ہے 


ਆਸਾ ਮਹਲਾ  
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
ਲੇਖ ਅਸੰਖ ਲਿਖਿ ਲਿਖਿ ਮਾਨੁ 
laykh asaNkh likh likh maan.
There are innumerable writings about God; by continually writing, the authors become egotistical about their knowledge.
ਪ੍ਰਭੂ ਬਾਰੇ ਅਣਗਿਣਤ ਲੇਖ ਲਿਖ ਲਿਖ ਕੇ ਲਿਖਣ ਵਾਲਿਆਂ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਆਪਣੀ ਵਿਦਿਆ ਦਾ ਅਹੰਕਾਰ ਹੀ ਪੈਦਾ ਹੁੰਦਾ ਹੈ
لیکھ اسنّکھ لِکھِ لِکھِ مانُ 
لیکھ۔مضمون ۔ کتابیں۔ مان ۔
خدا کے بارے میں ان گنت تحریریں ہیں۔ مستقل لکھنے سے مصنفین اپنے علم کے بارے میں مغرور ہوجاتے ہیں


ਮਨਿ ਮਾਨਿਐ ਸਚੁ ਸੁਰਤਿ ਵਖਾਨੁ 
man maanee-ai sach surat vakhaan.
When one’s heart accepts God, only then he can understands and speaks of Him.
ਜਦੋਂ ਮਨ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਵੀਕਾਰ ਕਰ ਲਵੇਕੇਵਲ ਤਾਂ ਹੀ ਉਹ ਇਸ ਨੂੰ ਸਮਝ ਅਤੇ ਬਿਆਨ ਕਰ ਸਕਦਾ
 منِ مانِئےَ سچُ سُرتِ ۄکھانُ 
غرور۔ من مانیے ۔ دل مانتا ہے ۔ سچ سرت وکھان۔
لیکن اگر دل خدا سے جا ملے تو پھر عقل کو صداقت کا علم ہو جاتاہے


ਕਥਨੀ ਬਦਨੀ ਪੜਿ ਪੜਿ ਭਾਰੁ 
kathnee badnee parh parh bhaar.
Just uttering or reading again and again about His virtues (without accepting) only multiplies the load of ego on our minds.
ਉਸ ਦੇ ਗੁਣ ਕਹਣ ਨਾਲ ਬੋਲਣ ਨਾਲ ਤੇ ਮੁੜ ਮੁੜ ਪੜ੍ਹ ਕੇ ਭੀ (ਮਨ ਉਤੇ ਹਉਮੈ ਦਾਭਾਰ (ਹੀ ਵਧਦਾਹੈ
 کتھنیِ بدنیِ پڑِ پڑِ بھارُ 
یا ہوش حقیقت کی تشریح کتھنی بدنی۔ کہنے اور بولنے ۔ بھار۔ ذہنی بوجھ
لفظی بحث میں پڑ کر دل پر بوجھ پڑتا ہے


ਲੇਖ ਅਸੰਖ ਅਲੇਖੁ ਅਪਾਰੁ 
laykh asaNkh alaykh apaar. ||1||
There are innumerable writings about God’s virtues but He is infinite and beyond description. ||1||
ਪ੍ਰਭੂ ਬਾਰੇ ਅਣਗਿਣਤ ਲਿਖਤਾਂ ਹਨਪ੍ਰੱਤੂ ਬੇਅੰਤ ਸਾਹਿਬ ਅਕੱਥ ਹੀ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ 
 لیکھ اسنّکھ الیکھُ اپارُ ੧॥
تصانیف تو بے شمار ہیں لیکن لا متناہی خدا کو ضبط تحریر میں نہیں لایا جا سکتا


ਐਸਾ ਸਾਚਾ ਤੂੰ ਏਕੋ ਜਾਣੁ 
aisaa saachaa tooN ayko jaan.
O’ my friend, recognize only one such eternal God,
ਇਹੋ ਜਿਹਾ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਤੂੰ ਸਿਰਫ਼ ਇਕ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਹੀ ਜਾਣ ,
 ایَسا ساچا توُنّ ایکو جانھُ 
جان لو کہ ایسی سچی ہستی صرف ایک خدا کی ہے


ਜੰਮਣੁ ਮਰਣਾ ਹੁਕਮੁ ਪਛਾਣੁ  ਰਹਾਉ 
jaman marnaa hukam pachhaan. ||1|| rahaa-o.
and understand that birth and death is under His will. ||1||Pause||
ਅਤੇ ਬਾਕੀ ਜਗਤ ਦਾ ਜੰਮਣਾ ਮਰਨਾ ਉਸ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਹੁਕਮ ਹੀ ਸਮਝ  ਰਹਾਉ 
 جنّمنھُ مرنھا ہُکمُ پچھانھُ ੧॥ رہاءُ 
پییدا ہونا یا مر جانا سب اسی کا حکم ہے


ਮਾਇਆ ਮੋਹਿ ਜਗੁ ਬਾਧਾ ਜਮਕਾਲਿ 
 maa-i-aa mohi jag baaDhaa jamkaal.
Because of love for Maya, the world is in the grip of the fear of death.
 ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਦੇ ਕਾਰਨ ਜਗਤ ਮੌਤ ਦੇ ਸਹਮ ਵਿਚ ਬੱਝਾ ਪਿਆ ਹੈ,
 مائِیا موہِ جگُ بادھا جمکالِ 
جمکالِ۔ موت
مایا سے محبت کی وجہ سے ، دنیا موت کے خوف کی لپیٹ میں ہے


ਬਾਂਧਾ ਛੂਟੈ ਨਾਮੁ ਸਮ੍ਹ੍ਹਾਲਿ 
baaNDhaa chhootai naam samHaal.
The world can be released from this grip by meditating on God’s Name.
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਨੂੰ ਚੇਤੇ ਕਰ ਕੇ ਹੀ ਬੱਝਾ ਛੁਟ ਸਕਦਾ ਹੈ
 باںدھا چھوُٹےَ نامُ سم٘ہ٘ہالِ 
۔ باندھا۔ غلامی یا باندھا ہوا۔ نام سمہال ۔ نام دل میں بسانے سے گر سکھداتا۔ مرشد آرام پہنچانے والے ہے ۔ (2)
خدا کے نام پر غور کرتے ہوئے دنیا کو اس گرفت سے آزاد کیا جاسکتا ہے


ਗੁਰੁ ਸੁਖਦਾਤਾ ਅਵਰੁ  ਭਾਲਿ 
gur sukhdaata avar na bhaal.
The Guru is the giver of peace through Naam; do not look for anyone else.
ਗੁਰੂ ਹੀ (ਨਾਮ ਦੀ ਦਾਤ ਦੇ ਕੇਆਤਮਕ ਸੁਖ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈਗੁਰੂ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਹੋਰ ਕਿਸੇ ਦੀ ਭਾਲ ਨਾਂ ਕਰ 
 گُرُ سُکھداتا اۄرُ ن بھالِ 
ا نام دل میں بسانے سے گر سکھداتا۔ مرشد آرام پہنچانے والے ہے ۔ (2)
گرو ہی سکھ عطا کرتاہے اس لیے کسی اور کو نہ ڈھونڈ


ਹਲਤਿ ਪਲਤਿ ਨਿਬਹੀ ਤੁਧੁ ਨਾਲਿ 
halat palat nibhee tuDh naal. ||2||
This Naam would stand by you both in this and the next world. ||2||
ਇਹ ਨਾਮ ਹੀ ਇਸ ਲੋਕ ਤੇ ਪਰਲੋਕ ਵਿਚ ਤੇਰੇ ਨਾਲ ਨਿਭਦਾ ਹੈ 
 ہلتِ پلتِ نِبہیِ تُدھُ نالِ 
۔ ہلت پلت۔ ہر دو عالم ۔ نیہی ساتھ دیگا۔
اس جہان میں اور اگلے جہان میں خدا ہی تیرا ساتھ دے گا


ਸਬਦਿ ਮਰੈ ਤਾਂ ਏਕ ਲਿਵ ਲਾਏ 
sabad marai taaN ayk liv laa-ay.
When a person completely eradicates his self-conceit through the Guru’s word, only then he can attune his mind to God.
ਮਨੁੱਖ ਤਦੋਂ ਹੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਵਿਚ ਸੁਰਤਿ ਜੋੜ ਸਕਦਾ ਹੈ ਜਦੋਂ ਉਹ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਰਾਹੀਂ (ਮੋਹ ਵਲੋਂਮਰ ਜਾਏ 
سبدِ مرےَ تاں ایک لِۄ لاۓ 
۔ گرسبد۔ کلام مرشد 
شبد سے انا کا خاتمہ کر تب ہی خدا کو دل میں بسا سکے گا


ਅਚਰੁ ਚਰੈ ਤਾਂ ਭਰਮੁ ਚੁਕਾਏ 
achar charai taaN bharam chukaa-ay.
When one conquers one’s unconquerable evil desires, only then he can get rid of all worldly illusion.
ਤਦੋਂ ਹੀ ਜੀਵ ਮਨ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਦੂਰ ਕਰ ਸਕਦਾ ਹੈਜੇ (ਕਾਮਾਦਿਕ ਪੰਜਾਂ ਦੇਨਾਹ ਮੁਕਾਏ ਜਾ ਸਕਣ ਵਾਲੇ ਟੋਲੇ (ਦੇ ਪ੍ਰਭਾਵ ਨੂੰਮੁਕਾ ਦੇਵੇ
 اچرُ چرےَ تاں بھرمُ چُکاۓ 
جب من کو سکون ہوتا ہے تو سارے بھرم دور ہو جاتےہیں


ਜੀਵਨ ਮੁਕਤੁ ਮਨਿ ਨਾਮੁ ਵਸਾਏ 
jeevan mukat man naam vasaa-ay.
He who enshrines Naam in his heart attains liberation from vices while still alive. ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਨਾਮ ਵਸਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਇਸੇ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦੇ ਵਿਚ ਹੀ (ਇਹਨਾਂ ਪੰਜਾਂ ਦੇ ਪ੍ਰਭਾਵ ਤੋਂਆਜ਼ਾਦ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
 جیِۄن مُکتُ منِ نامُ ۄساۓ 
من میں اس کا نام بسانے سے اسی زندگی میں نجات مل جاتی ہے


ਗੁਰਮੁਖਿ ਹੋਇ  ਸਚਿ ਸਮਾਏ 
gurmukh ho-ay ta sach samaa-ay. ||3||
He merges in the eternal God by following the Guru’s teachings. ||3||
ਉਹ ਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂ (ਦੇ ਨਾਮਵਿਚ ਲੀਨ ਹੁੰਦਾ ਹੈ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸਨਮੁਖ ਰਹਿਕੇ 
 گُرمُکھِ ہوءِ ت سچِ سماۓ ੩॥
 
جب گرو کی تعلیم پر عمل کیا جائے تو دل میں صداقت سما جاتی ہے


ਜਿਨਿ ਧਰ ਸਾਜੀ ਗਗਨੁ ਅਕਾਸੁ 
jin Dhar saajee gagan akaas.
God, who created the earth and the sky,
(ਪ੍ਰਭੂਜਿਸ ਨੇ ਇਹ ਧਰਤੀ ਤੇ ਅਕਾਸ਼ ਆਦਿਕ ਰਚੇ ਹਨ,
جِنِ دھر ساجیِ گگنُ اکاسُ 
جس نے زمین آسمان اور ستاروں کی دنیا سجائی ہے


ਜਿਨਿ ਸਭ ਥਾਪੀ ਥਾਪਿ ਉਥਾਪਿ 
jin sabh thaapee thaap uthaap.
He who created the universe and who is able to create and destroy it.
ਜਿਸ ਨੇ ਸਾਰੀ ਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀ ਰਚੀ ਹੈ ਤੇ ਜੋ ਰਚ ਕੇ ਨਾਸ ਕਰਨ ਦੇ ਭੀ ਸਮਰੱਥ ਹੈ 
 جِنِ سبھ تھاپیِ تھاپِ اُتھاپِ 
اور جو تخلیق کر کے اس کو پھر فنا بھی کر دیتاہے


ਸਰਬ ਨਿਰੰਤਰਿ ਆਪੇ ਆਪਿ 
sarab nirantar aapay aap.
He Himself is thoroughly pervading within all.
ਉਹ ਆਪ ਹੀ ਆਪ ਸਭ ਦੇ ਅੰਦਰ ਇਕਰਸ ਮੌਜੂਦ ਹੈ,
سرب نِرنّترِ آپے آپِ 
جو خود ہستی کے روپ میں آکر ہر شے میں سمایا ہے


ਕਿਸੈ  ਪੂਛੇ ਬਖਸੇ ਆਪਿ 
kisai na poochhay bakhsay aap. ||4||
He does not consult anyone and He Himself blesses all. ||4||
ਆਪ ਹੀ (ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਉਤੇਬਖ਼ਸ਼ਸ਼ ਕਰਦਾ ਹੈ (ਇਹ ਬਖ਼ਸ਼ਸ਼ ਵਾਸਤੇਤੇ ਇਸ ਲਈ ਉਹ ਕਿਸੇ ਹੋਰ ਦੀ ਸਲਾਹ ਨਹੀਂ ਲੈਂਦਾ 
 کِسےَ ن پوُچھے بکھسے آپِ ੪॥
کِسےَ ن پوُچھے ۔ کسی سے پوچھے بغیر
وہ کسی سے پوچھے بغیر ہمیں بخش دیتا ہے


ਤੂ ਪੁਰੁ ਸਾਗਰੁ ਮਾਣਕ ਹੀਰੁ 
too pur saagar maanak heer.
O’ God, You Yourself are the world-ocean full of precious virtues.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਭਰਿਆ ਹੋਇਆ ਇਹ (ਸੰਸਾਰ-) ਸਮੁੰਦਰ ਹੈਂਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਇਸ ਵਿਚ ਮਾਣਕਹੀਰਾ ਹੈਂ,
 توُ پُرُ ساگرُ مانھک ہیِرُ 
ساگرُ۔ سمندر
 اے خدا ، آپ خود عالمگیر سمندر ہیں جو قیمتی خوبیوں سے بھرا ہوا ہے


ਤੂ ਨਿਰਮਲੁ ਸਚੁ ਗੁਣੀ ਗਹੀਰੁ 
too nirmal sach gunee gaheer.
You are immaculate, eternal and the treasure of virtues.
ਤੂੰ ਪਵਿਤ੍ਰਸਰੂਪ ਹੈਂਸਦਾਥਿਰ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਹੈਂਤੇ ਸਾਰੇ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਖ਼ਜ਼ਾਨਾ ਹੈਂ
توُ نِرملُ سچُ گُنھیِ گہیِرُ 
مرشد ۔ نرمل نام۔ پاک سچائی ۔
آپ پاک ابدی اور خوبیوں کا خزانہ ہو