Urdu-Page-373

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ॥
aasaa mehlaa 5.
Raag Aasaa, Fifth Guru:

 آسا مہلا   
 ਦੂਖ ਰੋਗ ਭਏ ਗਤੁ ਤਨ ਤੇ ਮਨੁ ਨਿਰਮਲੁ ਹਰਿ ਹਰਿ ਗੁਣ ਗਾਇ ॥
dookh rog bha-ay gat tan tay man nirmal har har gun gaa-ay.
By singing the praises of God my mind has become pure and all my sorrows and ailments have left my body.
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੇ ਗੀਤ ਗਾ ਗਾ ਕੇ ਮੇਰਾ ਮਨ ਪਵਿੱਤਰ ਹੋ ਗਿਆ ਹੈਮੇਰੇ ਸਰੀਰ ਤੋਂ ਸਾਰੇ ਦੁੱਖ ਤੇ ਰੋਗ ਦੂਰ ਹੋ ਗਏ ਹਨ 
 دوُکھ روگ بھۓ گتُ تن تے منُ نِرملُ ہرِ ہرِ گُنھ گاءِ  
دکھ روگ بھیئے گت۔ عذآب اور بیماریاں دور ہوتیں۔ نرمل۔ پاک ۔
الہٰی صفت صلاح سے قلب پاک ہو گیا ۔ جسمانی عذاب اور بیماریاں دور ہو گئی ہیں

 ਭਏ ਅਨੰਦ ਮਿਲਿ ਸਾਧੂ ਸੰਗਿ ਅਬ ਮੇਰਾ ਮਨੁ ਕਤ ਹੀ ਨ ਜਾਇ ॥੧॥
bha-ay anand mil saaDhoo sang ab mayraa man kat hee na jaa-ay. ||1||
Upon meeting the Guru a sense of bliss has prevailed in me and now my mind doesn’t wander anywhere. ||1||
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤ ਵਿਚ ਮਿਲ ਕੇ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਆਨੰਦ ਹੋ ਗਿਆ ਹੈ ਅਤੇ ਹੁਣ ਇਹ ਕਿਸੇ ਭੀ ਪਾਸੇ ਨਹੀਂ ਭਟਕਦਾ 
 بھۓ اننّد مِلِ سادھوُ سنّگِ اب میرا منُ کت ہیِ ن جاءِ  
کت ہی کہیں بھی (1) مائے ۔ اے ماں ۔ دنس گیؤمٹ گیا۔
پاکدامن عارفوں کی صحبت و قربت سے میرے دل کی بھٹکن دور ہو گئی ہے

 ਤਪਤਿ ਬੁਝੀ ਗੁਰ ਸਬਦੀ ਮਾਇ ॥
tapat bujhee gur sabdee maa-ay.
O’ my mother, through the Guru’s Word the fire of worldly desires and vices has been quenched.
 
ਹੇ ਮਾਂਗੁਰੂ ਦੇ ਸਬਦ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰੋਂ ਵਿਕਾਰਾਂ ਦੀ ਸੜਨ ਮਿਟ ਗਈ ਹੈ
 تپتِ بُجھیِ گُر سبدیِ ماءِ  
تپت۔ دل کی جلن ۔
ماں کلام مرشد سے میرے دل کی تپش ختم ہوگئی ہے

 ਬਿਨਸਿ ਗਇਓ ਤਾਪ ਸਭ ਸਹਸਾ ਗੁਰੁ ਸੀਤਲੁ ਮਿਲਿਓ ਸਹਜਿ ਸੁਭਾਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
binas ga-i-o taap sabh sahsaa gur seetal mili-o sahj subhaa-ay. ||1|| rahaa-o.
 Intuitively I have met such a soothing and peace giving Guru that all my anguish and dread has disappeared. ||1||Pause||
 ਸਾਰੇ ਦੁੱਖ ਕਲੇਸ਼ ਤੇ ਸਹਮ ਨਾਸ ਹੋ ਗਏ ਹਨ ਆਤਮਕ ਠੰਡ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਗੁਰੂ ਸਹਜਿ ਸੁਭਾਇ ਹੀ ਮਿਲ ਪਿਆ ਹੈ  ਰਹਾਉ  
 بِنسِ گئِئو تاپ سبھ سہسا گُرُ سیِتلُ مِلِئو سہجِ سُبھاءِ  رہاءُ  
سہسا ۔ فکر مندی ۔ سہج۔ قدرتی سبھائے ۔ پریم میں (1)رہاؤ۔
میرے جھگڑے عذاب اور فکر مٹ گئے ہیں اور روحانی سکون عنایت کرنے والے مرشد سے ملاپ ہو گیا ۔ اب مین مستقل مزا ج ہوگیا ہوں اور الہٰی پریم پیار میں محو ہوں (1) رہاؤ

 ਧਾਵਤ ਰਹੇ ਏਕੁ ਕੁ ਬੂਝਿਆ ਆਇ ਬਸੇ ਅਬ ਨਿਹਚਲੁ ਥਾਇ ॥
Dhaavat rahay ayk ik boojhi-aa aa-ay basay ab nihchal thaa-ay.
Since the time I have realized the one and only God, all my wanderings have ended and now I dwell in the state of equipoise.
 
ਜਦੋਂ ਦੀ ਮੈਂ ਸਿਰਫ਼ ਇਕ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨਾਲ ਸਾਂਝ ਪਾਈ ਹੈ ਮੇਰੀਆਂ ਸਾਰੀਆ ਭਟਕਣਾਂ ਮੁੱਕ ਗਈਆਂ ਹਨਹੁਣ ਮੈਂ ਅਡੋਲਚਿੱਤ ਹੋ ਕੇ ਪ੍ਰਭੂ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ  ਟਿਕਿਆ ਹਾਂ l
 دھاۄت رہے ایکُ اِکُ بوُجھِیا آءِ بسے اب نِہچلُ تھاءِ  
دھاوت ۔ بھٹکن ۔ رہے ۔ ختم ہوئی۔ تھائے ۔ ٹھکانے ۔ نہچل ۔ مستقل ۔
جب سے واحد خدا کی پہچان اور سمجھ آئی ہے اب دل میں مستقل طور پر بس گیا ہے 

 ਜਗਤੁ ਉਧਾਰਨ ਸੰਤ ਤੁਮਾਰੇ ਦਰਸਨੁ ਪੇਖਤ ਰਹੇ ਅਘਾਇ ॥੨॥
 jagat uDhaaran sant tumaaray darsan paykhat rahay aghaa-ay. ||2||
 O’ God, beholding the blessed vision of Your saints, the savior of the world from the vices, my worldly desires have ended and I remain satisfied. ||2||
 
(ਹੇ ਪ੍ਰਭੂ!) ਸਾਰੇ ਸੰਸਾਰ ਨੂੰ ਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂ ਬਚਾਣ ਵਾਲੇ ਤੇਰੇ ਸੰਤ ਜਨਾਂ ਦਾ ਦਰਸ਼ਨ ਕਰ ਕੇ ਮੇਰੀ ਸਾਰੀ ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਮੁੱਕ ਗਈ ਹੈ  
 جگتُ اُدھارن سنّت تُمارے درسنُ پیکھت رہے اگھاءِ  
اگھائے ۔ خواہش باقی نہ رہی (2)
خدا سارے عالم کو بدیؤں اور برائیوں سے بچانے والے اے خدا پاکدامن عارف کے دیدار سے میری تمام خواہشات ختم ہوگئی ہیں۔ (2)

 ਜਨਮ ਦੋਖ ਪਰੇ ਮੇਰੇ ਪਾਛੈ ਅਬ ਪਕਰੇ ਨਿਹਚਲੁ ਸਾਧੂ ਪਾਇ ॥
janam dokh paray mayray paachhai ab pakray nihchal saaDhoo paa-ay.
O’ my mother, now with stable mind I have come to the Guru’s refuge; the sins of my many lives have become a thing of the past.
 
(ਹੇ ਮਾਂ!) ਹੁਣ ਮੈਂ ਅਡੋਲਚਿੱਤ ਹੋ ਕੇ ਗੁਰੂ ਦੇ ਪੈਰ ਫੜ ਲਏ ਹਨਮੇਰੇ ਅਨੇਕਾਂ ਜਨਮਾਂ ਦੇ ਪਾਪ ਮੇਰੀ ਖ਼ਲਾਸੀ ਕਰ ਗਏ ਹਨ
 جنم دوکھ پرے میرے پاچھےَ اب پکرے نِہچلُ سادھوُ پاءِ  
دوکھ ۔ عیب ۔ برائیاں ۔ سادھو۔ پاکدامن جس نے اپنے اپ کو پاک کرلیا۔ نہچل۔ تھائے ۔ مستقل مقام ۔ ادھارن۔ فائدے کے لئے ۔
زندگی کے تمام گناہ وعذاب ختم ہوگئے ہیں اور میں بغیر کسی ہچکچاہٹ سے پاکدامن عارف کی صحبت اختیار کر لی ہے

 ਸਹਜ ਧੁਨਿ ਗਾਵੈ ਮੰਗਲ ਮਨੂਆ ਅਬ ਤਾ ਕਉ ਫੁਨਿ ਕਾਲੁ ਨ ਖਾਇ ॥੩॥
sahj Dhun gaavai mangal manoo-aa ab taa ka-o fun kaal na khaa-ay. ||3||
Intuitively my mind keeps signing the celestial praises of God, because it is confident that now it will not be consumed by the fear of spiritual death. ||3||

 ਮੇਰਾ ਮਨ ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ ਦੀ ਸੁਰ ਵਿਚ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੇ ਗੀਤ ਗਾਂਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈਹੁਣ ਇਸ ਮਨ ਨੂੰ ਕਦੇ ਆਤਮਕ ਮੌਤ ਹੜੱਪ ਨਹੀ ਕਰਦੀ 
 سہج دھُنِ گاۄےَ منّگل منوُیا اب تا کءُ پھُنِ کالُ ن کھاءِ  
آگھائے ۔ خواہشات ختم ہوئیں ۔ منگل خوشی ۔ تن دوبارہ (3)
اب میرا دل روحانی سکون اور خوشی سے مخمور الہٰی صفت صلاح کرتا ہے اور روحانی موت واقع نہیں ہوتی ۔ (3)

 ਕਰਨ ਕਾਰਨ ਸਮਰਥ ਹਮਾਰੇ ਸੁਖਦਾਈ ਮੇਰੇ ਹਰਿ ਹਰਿ ਰਾਇ ॥
karan kaaran samrath hamaaray sukhdaa-ee mayray har har raa-ay.
O’ my sovereign God, the giver of peace, all powerful and the Cause of causes,
 
ਹੇ ਮੇਰੇ ਪ੍ਰਭੂ ਪਾਤਸ਼ਾਹਹੇ ਸੁਖਾਂ ਦੇ ਬਖ਼ਸ਼ਣ ਵਾਲੇਹੇ ਸਭ ਕੁਝ ਕਰਨ ਤੇ ਕਰਾਣ ਦੀ ਸ਼ਕਤੀ ਰੱਖਣ ਵਾਲੇ!
 کرن کارن سمرتھ ہمارے سُکھدائیِ میرے ہرِ ہرِ راءِ  
سکھدائی ۔ سکھ دینے والے ۔
اے میرے خداوند کریم شہنشاہ کار ساز کرنے اورکرانے کی طاقت رکھنے والl

 ਨਾਮੁ ਤੇਰਾ ਜਪਿ ਜੀਵੈ ਨਾਨਕੁ ਓਤਿ ਪੋਤਿ ਮੇਰੈ ਸੰਗਿ ਸਹਾਇ ॥੪॥੯॥
naam tayraa jap jeevai naanak ot pot mayrai sang sahaa-ay. ||4||9||
Nanak is spiritually alive by meditating on Your Name. You are my continuous support. ||4||9||
ਨਾਨਕ ਤੇਰਾ ਨਾਮ ਯਾਦ ਕਰ ਕਰ ਕੇ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਹਾਸਲ ਕਰ ਰਿਹਾ ਹੈਤੂੰ ਮੇਰੇ ਨਾਲ ਹਰ ਵੇਲੇ ਦਾ ਸਾਥੀ ਹੈਂ  
 نامُ تیرا جپِ جیِۄےَ نانکُ اوتِ پوتِ میرےَ سنّگِ سہاءِ 
اوت پوت۔ تانے پیٹے کی مانندا۔ سہائے ۔ ساتھی مددگار۔
تیرا خادم نانک تیری یاد سے روحانی زندگی پا رہا ہے اور مجھے تانے پیٹے کی مانند شراکت حآصل ہے

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ॥
aasaa mehlaa 5.
Raag Aasaa, Fifth Guru:
 آسا مہلا   
 ਅਰੜਾਵੈ ਬਿਲਲਾਵੈ ਨਿੰਦਕੁ ॥
 arrhaavai billaavai nindak.
 
The slanderer of saintly persons cries out in pain and bewails.
 
ਭਗਤ ਜਨਾਂ ਦੀ ਨਿੰਦਾ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰ ਬੜਾ ਦੁੱਖੀ ਹੁੰਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ਬੜਾ ਵਿਲਕਦਾ ਹੈ
 ارڑاۄےَ بِللاۄےَ نِنّدکُ  
ارڑاوے بلاوے ۔ آہ وزاری کرتا ہے ۔ نندک ۔ بدگوئی کرنے والا۔
بد گوئی کرنے والا آہ وزاری کرتا ہے ۔

 ਪਾਰਬ੍ਰਹਮੁ ਪਰਮੇਸਰੁ ਬਿਸਰਿਆ ਅਪਣਾ ਕੀਤਾ ਪਾਵੈ ਨਿੰਦਕੁ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
 paarbarahm parmaysar bisri-aa apnaa keetaa paavai nindak. ||1|| rahaa-o
 The slanderer has forgotten the Supreme God and suffers the consequences of his own bad deeds. ||1||Pause||

 ਉਸ ਨੂੰ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਭੁੱਲਿਆ ਹੁੰਦਾ ਹੈਨਿੰਦਕ ਗੁਰਮੁਖਾਂ ਦੀ ਕੀਤੀ ਨਿੰਦਾ ਦਾ ਦੁੱਖਰੂਪ ਫਲ ਭੋਗਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 پارب٘رہمُ پرمیسرُ بِسرِیا اپنھا کیِتا پاۄےَ نِنّدکُ  رہاءُ  
پار برہم۔ پارلگانیوالا۔ کامیاب بنانے والا۔ وسریا بھلایئیا ۔ (1) رہاؤ۔
خدا کو بھلا کر اپنے کئے ہوئے نندیا یا بدگوئی کی سزا پاتا ہے (1) رہاؤ۔

 ਜੇ ਕੋਈ ਉਸ ਕਾ ਸੰਗੀ ਹੋਵੈ ਨਾਲੇ ਲਏ ਸਿਧਾਵੈ ॥
 jay ko-ee us kaa sangee hovai naalay la-ay siDhaavai.
 If anyone associates with him, then he also gets in the habit of slandering.
 
ਜੇ ਕੋਈ ਉਸ ਨਿੰਦਕ ਦਾ ਸਾਥੀ ਬਣੇਤਾਂ ਨਿੰਦਕ ਉਸ ਨੂੰ ਭੀ ਆਪਣੇ ਨਾਲ ਲੈ ਤੁਰਦਾ ਹੈ (ਨਿੰਦਾ ਕਰਨ ਦੀ ਵਾਦੀ ਪਾ ਦੇਂਦਾ ਹੈ)
 جے کوئیِ اُس کا سنّگیِ ہوۄےَ نالے لۓ سِدھاۄےَ  
سنگی ۔ ساتھی ۔ سدھاوے ۔ اسی کام لگاتا ہے ۔
اگر کوئی انسان بد گوئی کرنے والے کا ساتھی ہو جائے تو اس کو بھی اسی راستے پر لگاتا ہے
 ۔

 ਅਣਹੋਦਾ ਅਜਗਰੁ ਭਾਰੁ ਉਠਾਏ ਨਿੰਦਕੁ ਅਗਨੀ ਮਾਹਿ ਜਲਾਵੈ ॥੧॥
anhodaa ajgar bhaar uthaa-ay nindak agnee maahi jalaavai. ||1||
The slanderer carries such a heavy load of sins as if carrying an imaginary dragon and keeps suffering as if burning in the fire of slandering others. ||1||
ਨਿੰਦਕ ਮਨੋਕਲਪਤ ਹੀ ਬੇਅੰਤ ਭਾਰ ਸਿਰ ਉਤੇ ਚੁੱਕੀ ਫਿਰਦਾ ਹੈਤੇ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਨਿੰਦਾ ਦੀ ਅੱਗ ਵਿਚ ਸਾੜਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ 
 انھہودا اجگرُ بھارُ اُٹھاۓ نِنّدکُ اگنیِ ماہِ جلاۄےَ  
انحودا۔ جو نہیں ہے ۔ جگر۔ بھاری سانپ
دلی طور پر بلاوجود بلا مطلب اپنے دل کی بناوٹ سے بنا کر بد گوئی کو بوجھ اپنے زمے لیتا ہے اور بد گوئی کی آگ میں جلتا ہے ۔ (1)

 ਪਰਮੇਸਰ ਕੈ ਦੁਆਰੈ ਜਿ ਹੋਇ ਬਿਤੀਤੈ ਸੁ ਨਾਨਕੁ ਆਖਿ ਸੁਣਾਵੈ ॥
parmaysar kai du-aarai je ho-ay biteetai so naanak aakh sunaavai.
What happens to a slanderer in God’s court, that is what Nanak is telling and describing.
 
ਜੇਹੜਾ ਨਿਯਮ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਦਰ ਤੇ ਸਦਾ ਵਰਤਦਾ ਹੈਨਾਨਕ ਉਹ ਨਿਯਮ (ਤੁਹਾਨੂੰਖੋਲ੍ਹ ਕੇ ਸੁਣਾਂਦਾ ਹੈ l
 پرمیسر کےَ دُیارےَ جِ ہوءِ بِتیِتےَ سُ نانکُ آکھِ سُنھاۄےَ  
بتیتے ، گزارتا ہے ۔ وگاوے ۔خوش ہوگا ہے
بارگاہ الہٰی پر جو عمل ہے وہ نانک کہہ کرسناتارہتا ہے

 ਭਗਤ ਜਨਾ ਕਉ ਸਦਾ ਅਨੰਦੁ ਹੈ ਹਰਿ ਕੀਰਤਨੁ ਗਾਇ ਬਿਗਸਾਵੈ ॥੨॥੧੦॥
bhagat janaa ka-o sadaa anand hai har keertan gaa-ay bigsaavai. ||2||10||
The humble devotees of God are forever in bliss; singing God’s Praises, they always remain delighted. ||2||10||
 
ਭਗਤ ਜਨਾਂ ਨੂੰ ਸਦਾ ਆਨੰਦ ਪ੍ਰਾਪਤ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੇ ਗੀਤ ਗਾ ਗਾ ਕੇ ਖ਼ੁਸ਼ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ ੧੦
 بھگت جنا کءُ سدا اننّدُ ہےَ ہرِ کیِرتنُ گاءِ بِگساۄےَ ੧੦ 
عاشقان و عابدان ورضا کار الہٰی کے لئے وہاں سکون خوشیاں اور الہٰی صفت صلاح سے خوش رہتے ہیں۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ॥
aasaa mehlaa 5.
Raag Aasaa, Fifth Guru:
 آسا مہلا   
 ਜਉ ਮੈ ਕੀਓ ਸਗਲ ਸੀਗਾਰਾ ॥
ja-o mai kee-o sagal seegaaraa.
(On behalf of that separated soul-bride, Guru Ji says): O’ my mother, Even when I decorated myself in every way,
 
ਜਦੋਂ ਮੈਂ ਹਰੇਕ ਕਿਸਮ ਦਾ ਸਿੰਗਾਰ ਕੀਤਾ,
 جءُ مےَ کیِئو سگل سیِگارا  
اے ماں میرے ہر قسم کی سجاوٹ کرنے 

 ਤਉ ਭੀ ਮੇਰਾ ਮਨੁ ਨ ਪਤੀਆਰਾ ॥
ta-o bhee mayraa man na patee-aaraa.
still, my mind was not satisfied.
 
ਤਾਂ ਭੀ ਮੇਰਾ ਮਨ ਸੰਤੁਸ਼ਟ ਨਾਹ ਹੋਇਆ
 تءُ بھیِ میرا منُ ن پتیِیارا  
نہ پتیار ۔ تسلی نہ ہوئی ۔
 کے باجود تسلی نہیں ہوئ

 ਅਨਿਕ ਸੁਗੰਧਤ ਤਨ ਮਹਿ ਲਾਵਉ ॥
anik suganDhat tan meh laava-o.
I applied innumerable types of perfumes to my body,
 
ਜੇ ਮੈਂ ਆਪਣੇ ਸਰੀਰ ਉਤੇ ਅਨੇਕਾਂ ਸੁਗੰਧੀਆਂ ਵਰਤਦੀ ਹਾਂ,
 انِک سُگنّدھت تن مہِ لاۄءُ  
سگندھت۔ خوشبو ہیں۔
بیشمار خوشبو ئیں جسم پر لگانے سے بھی

 ਓਹੁ ਸੁਖੁ ਤਿਲੁ ਸਮਾਨਿ ਨਹੀ ਪਾਵਉ ॥
oh sukh til samaan nahee paava-o.
still, I did not obtain even a tiny bit of that peace (which is obtained in union with husband-God).
 
ਤਾਂ ਭੀ ਮੈਂ ਤਿਲ ਜਿਤਨਾ ਭੀ ਉਹ ਸੁਖ ਨਹੀਂ ਹਾਸਲ ਕਰ ਸਕਦੀ (ਜੋ ਸੁਖ ਪਿਆਰੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੇ ਦਰਸ਼ਨ ਤੋਂ ਮਿਲਦਾ ਹੈ)
 اوہُ سُکھُ تِلُ سمانِ نہیِ پاۄءُ  
اوہ ۔ وہ مراد الہٰی ۔ ملاپ جیسا۔ سمان ۔ برابر۔
 ایک تل کے برابر سکھ حاصل نہیں ہوا

 ਮਨ ਮਹਿ ਚਿਤਵਉ ਐਸੀ ਆਸਾਈ 
man meh chitva-o aisee aasaa-ee.
Within my mind, I hold such a longing,
 
ਮੈਂ ਆਪਣੇ ਚਿੱਤ ਅੰਦਰ ਐਹੋ ਜਿਹੀ ਤਾਂਘ ਧਾਰਨ ਕੀਤੀ ਹੈ,
 من مہِ چِتۄءُ ایَسیِ آسائیِ  
آسمانی ۔ امید
میرے ردل میں ایسی اُمید بنی ہوئی ۔

 ਪ੍ਰਿਅ ਦੇਖਤ ਜੀਵਉ ਮੇਰੀ ਮਾਈ ॥੧॥
pari-a daykhat jeeva-o mayree maa-ee. ||1||
that I may remain spiritually alive by seeing my Beloved-God, O my mother. ||1||
 ਹੇ ਮੇਰੀ ਮਾਂ ਪਿਆਰੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦਾ ਦਰਸ਼ਨ ਕਰ ਕੇ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਪੈਦਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 پ٘رِء دیکھت جیِۄءُ میریِ مائیِ  
پر یہ ۔ پیار ۔ مراد ۔ خدا ۔
ہے کہ پیارے کے دیدارے سے مجھے روحانیت اور روحانی زندگی حاصل ہوگی

 ਮਾਈ ਕਹਾ ਕਰਉ ਇਹੁ ਮਨੁ ਨ ਧੀਰੈ ॥
maa-ee kahaa kara-o ih man na Dheerai.
O mother, what should I do? This mind doesn’t rest in peace.
 
ਹੇ ਮਾਂਮੈਂ ਕੀਹ ਕਰਾਂ? (ਪਿਆਰੇ ਤੋਂ ਬਿਨਾਮੇਰਾ ਮਨ ਖਲੋਂਦਾ ਨਹੀਂ 
 مائیِ کہا کرءُ اِہُ منُ ن دھیِرےَ  
دھیرے ۔ یقین ۔
اے ماں کیا کرؤں میرے دل بے صبر ہو رہا ہے

 ਪ੍ਰਿਅ ਪ੍ਰੀਤਮ ਬੈਰਾਗੁ ਹਿਰੈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
pari-a pareetam bairaag hirai. ||1|| rahaa-o.
The longing for the beloved has captivated it very much. ||1||Pause||
 ਪਿਆਰੇ ਪ੍ਰੀਤਮ ਦਾ ਪ੍ਰੇਮ ਖਿੱਚ ਪਾ ਰਿਹਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ  
 پ٘رِء پ٘ریِتم بیَراگُ ہِرےَ  رہاءُ  
پریہ پریتم۔ پیارا ۔ ویراگ۔ پریم ۔ برے ۔ کشش ۔ (1) رہاؤ۔
دل کو میرے پیارے خدا کی پریم کی کشش ہو رہی ہے (1) رہاؤ۔ ۔

 ਬਸਤ੍ਰ ਬਿਭੂਖਨ ਸੁਖ ਬਹੁਤ ਬਿਸੇਖੈ ॥ ਓਇ ਭੀ ਜਾਨਉ ਕਿਤੈ ਨ ਲੇਖੈ ॥
bastar bibhookhan sukh bahut bisaykhai. o-ay bhee jaan-o kitai na laykhai.
I feel that without the Husband-God, garments, jewelry, and the exquisite pleasures are of no avail.
 
ਮੈਂ ਸਮਝਦੀ ਹਾਂ ਕਿ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਸਾਰੇ ਕੱਪੜੇਗਹਣੇਅਤੇ ਪਰਮ ਉੱਤਮ ਖੁਸ਼ੀਆਂ ਕਿਸੇ ਕੰਮ ਨਹੀਂ
 بست٘ر بِبھوُکھن سُکھ بہُت بِسیکھےَ  
بھبؤکھن۔ زیور۔ بیسکھئے ۔ خاصکر
کپڑے زیور اور بہت سے دنیاوی سامان آرام وصائش کی بھی میرے دل میں کوئی قدرو قیمت نہیں

 ਪਤਿ ਸੋਭਾ ਅਰੁ ਮਾਨੁ ਮਹਤੁ ॥
pat sobhaa ar maan mahat.
Even if I may enjoy, honor, fame, dignity and greatness,
 
ਇੱਜ਼ਤਸੋਭਾਆਦਰਵਡਿਆਈ (ਭੀ ਮਿਲ ਜਾਏ),
 پتِ سوبھا ارُ مانُ مہتُ  
پت۔ عزت۔ میت۔ وقار۔
عزت شہرت وقار اور عت افزائی

 ਆਗਿਆਕਾਰੀ ਸਗਲ ਜਗਤੁ ॥
 aagi-aakaaree sagal jagat.
 
and the entire world may become obedient to me,
 
ਸਾਰਾ ਜਗਤ ਮੇਰੀ ਆਗਿਆ ਵਿਚ ਤੁਰਨ ਲੱਗ ਪਏ,
 آگِیاکاریِ سگل جگتُ 
اور سارے عالم کی ہدایت کاری

 ਗ੍ਰਿਹੁ ਐਸਾ ਹੈ ਸੁੰਦਰ ਲਾਲ ॥
garihu aisaa hai sundar laal.
and live in a beautiful household as expensive as a jewel.
 
ਬੜਾ ਸੋਹਣਾ ਤੇ ਕੀਮਤੀ ਘਰ (ਰਹਿਣ ਵਾਸਤੇ ਮਿਲਿਆ ਹੋਵੇ),
 گ٘رِہُ ایَسا ہےَ سُنّدر لال  
سندر۔خوبصورت ۔ لال۔ قیمتی اشیا۔
یر فرمانی ہو رہائش کے خوبصورت مکان بھی ہوں 

 ਪ੍ਰਭ ਭਾਵਾ ਤਾ ਸਦਾ ਨਿਹਾਲ ॥੨॥
parabh bhaavaa taa sadaa nihaal. ||2||
even then, I could only remain happy forever If I am pleasing to Husband-God. ||2||
 
ਤਦੋਂ ਹੀ ਮੈਂ ਸਦਾ ਲਈ ਖ਼ੁਸ਼ ਰਹਿ ਸਕਦੀ ਹਾਂ ਜੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਪਿਆਰੀ ਲੱਗਾਂ 
 پ٘ربھ بھاۄا تا سدا نِہال  
پربھ بھاوا۔ اگر خدا کا پیارا ہو جاؤں۔ نہال۔ خوشی
مگر اگر خداکا پیارا ہو جاؤں تبھی صدیوی خوشی ملے گی ۔ 

 ਬਿੰਜਨ ਭੋਜਨ ਅਨਿਕ ਪਰਕਾਰ ॥
binjan bhojan anik parkaar.
Even if I may be able to enjoy many kinds foods and delicacies,
 
ਜੇ ਅਨੇਕਾਂ ਕਿਸਮ ਦੇ ਸੁਆਦਲੇ ਖਾਣੇ ਮਿਲ ਜਾਣ,
 بِنّجن بھوجن انِک پرکار  
بخجن۔ بھوجن ۔ پر لطف مزیدار کھانے ۔
طرح طرح مزیدار پر لطف کھانے ملیں گے

 ਰੰਗ ਤਮਾਸੇ ਬਹੁਤੁ ਬਿਸਥਾਰ ॥
rang tamaasay bahut bisthaar.
and all kind of pleasures and entertainments,
 
ਬਹੁਤ ਤਰ੍ਹਾਂ ਦੇ ਰੰਗ ਤਮਾਸ਼ੇ (ਵੇਖਣ ਨੂੰ ਹੋਣ),
 رنّگ تماسے بہُتُ بِستھار  
وستھار۔ پھیلاؤ۔
اور کئی طرح کے خوشنما ناچ گانے اور تماشے ہوں

 ਰਾਜ ਮਿਲਖ ਅਰੁ ਬਹੁਤੁ ਫੁਰਮਾਇਸਿ ॥
raaj milakh ar bahut furmaa-is.
I may have vast dominions and command over vast territories,
 
ਰਾਜ ਮਿਲ ਜਾਏਭੁਇਂ ਦੀ ਮਾਲਕੀ ਹੋ ਜਾਏ ਅਤੇ ਬਹੁਤ ਹਕੂਮਤ ਮਿਲ ਜਾਏ,
 راج مِلکھ ارُ بہُتُ پھُرمائِسِ  
راج۔ حکومت۔ ملکھ ۔ جائیداد ۔ فرمائش ۔ حکمرانی ۔
بادشاہی جائیداد اور زمینیں ہوں اور حکمرانی ہو

 ਮਨੁ ਨਹੀ ਧ੍ਰਾਪੈ ਤ੍ਰਿਸਨਾ ਨ ਜਾਇਸਿ ॥
man nahee Dharaapai tarisnaa na jaa-is.
still the mind doesn’t get satiated and its craving does not end.
 
ਤਾਂ ਭੀ ਇਹ ਮਨ ਕਦੇ ਰੱਜਦਾ ਨਹੀਂਇਸ ਦੀ ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਮੁੱਕਦੀ ਨਹੀਂ
 منُ نہیِ دھ٘راپےَ ت٘رِسنا نا جائِسِ  
دھراپے ۔ تسلی۔ سیر ۔ ترشنا۔ خواہش۔ جائیس ۔ جاتی ۔
تب بھی اس کی تسلی اور خواہش پوری نہیں ہوتی

 ਬਿਨੁ ਮਿਲਬੇ ਇਹੁ ਦਿਨੁ ਨ ਬਿਹਾਵੈ ॥
 bin milbay ih din na bihaavai.
 Without meeting the Husband-God, this day of mine does not pass in peace.
 
ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਮਿਲਣ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਮੇਰਾ ਇਹ ਦਿਨ (ਸੁਖ ਨਾਲਨਹੀਂ ਲੰਘਦਾ
 بِنُ مِلبے اِہُ دِنُ ن بِہاۄےَ  
وہاوے ۔ گذرتا (3)
بغیر الہٰی ملاپ کے دن نہیں گذرتا ملاپ ہونے پر تمام آرام و آسائش حاصل ہیں۔ (3)

 ਮਿਲੈ ਪ੍ਰਭੂ ਤਾ ਸਭ ਸੁਖ ਪਾਵੈ ॥੩॥
milai parabhoo taa sabh sukh paavai. ||3||
 The soul-bride enjoys total bliss only when she unites with God. ||3||
 
ਜਦੋਂ (ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਨੂੰਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਮਿਲ ਪਏ ਤਾਂ ਉਹ (ਮਾਨੋਸਾਰੇ ਸੁਖ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲੈਂਦੀ ਹੈ 
 مِلےَ پ٘ربھوُ تا سبھ سُکھ پاۄےَ 
کہ صحبت و قربت پاکدامن عارفان الہٰی کے بغیر کسی کا کامیابی حاصل نہیں ہوئ

 ਖੋਜਤ ਖੋਜਤ ਸੁਨੀ ਇਹ ਸੋਇ ॥
khojat khojat sunee ih so-ay.
After a long and arduous search, I have heard this news,
 
ਭਾਲ ਕਰਦਿਆਂ ਕਰਦਿਆਂ ਮੈਂ ਇਹ ਖ਼ਬਰ ਸੁਣ ਲਈ,
 کھوجت کھوجت سُنیِ اِہ سوءِ  
سوئے ۔ خر
تلاش کرتے کرتے اور ڈھونڈتے یہ خبر سنی

 ਸਾਧਸੰਗਤਿ ਬਿਨੁ ਤਰਿਓ ਨ ਕੋਇ ॥
saaDhsangat bin tari-o na ko-ay.
 that without the Holy congregation, no one has ever crossed over the world ocean of vices.
 
ਕਿ ਸਾਧ ਸੰਗਤਿ ਤੋਂ ਬਿਨਾ (ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਦੇ ਹੜ੍ਹ ਤੋਂਕੋਈ ਜੀਵ ਕਦੇ ਪਾਰ ਨਹੀਂ ਲੰਘ ਸਕਿਆ
 سادھسنّگتِ بِنُ ترِئو ن کوءِ 
اور اسے اپنے دل وجان میں ہی ددیار ہو جاتا ہے اور بس جاتا ہے۔

 ਜਿਸੁ ਮਸਤਕਿ ਭਾਗੁ ਤਿਨਿ ਸਤਿਗੁਰੁ ਪਾਇਆ ॥
jis mastak bhaag tin satgur paa-i-aa.
The person who is preordained meets the true Guru.
 
ਜਿਸ ਦੇ ਮੱਥੇ ਉਤੇ ਚੰਗਾ ਭਾਗ ਜਾਗਿਆ ਉਸ ਨੇ ਗੁਰੂ ਲੱਭ ਲਿਆ,
 جِسُ مستکِ بھاگُ تِنِ ستِگُرُ پائِیا  
مستک ۔ پیشانی ۔
جس کی پشیانی پر کنندہ ہو اس کی قسمت میں اسے سچا مرشد ملتا ہے

 ਪੂਰੀ ਆਸਾ ਮਨੁ ਤ੍ਰਿਪਤਾਇਆ ॥
pooree aasaa man tariptaa-i-aa.
His hopes are fulfilled and his mind becomes satisfied.
ਉਸ ਦੀ ਹਰੇਕ ਆਸ ਪੂਰੀ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਅਤੇ ਉਸ ਦਾ ਮਨ ਰੱਜ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 پوُریِ آسا منُ ت٘رِپتائِیا  
ترپتایئیا ۔ تسکین ہوئی
اس کی امیدیں پوری ہوتی ہے دل کی تمنا ئیں ختم ہو جائیں ہیں۔

 ਪ੍ਰਭ ਮਿਲਿਆ ਤਾ ਚੂਕੀ ਡੰਝਾ ॥
parabh mili-aa taa chookee danjhaa.
When one realizes God, then the fire of his worldly desires gets quenched.
 
ਜਦੋਂ ਜੀਵ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪਿਆ ਉਸ ਦੀ ਅੰਦਰਲੀ ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਦੀ ਭੜਕੀ ਮੁੱਕ ਜਾਂਦੀ ਹੈ 
 پ٘ربھ مِلِیا تا چوُکیِ ڈنّجھا  
 ڈنجھا۔ بھٹکن۔ چوکی ۔ ختم ہوئی ۔
الہٰی ملاپ سے دل کی بھٹکن ختم ہو جاتی ہے

 ਨਾਨਕ ਲਧਾ ਮਨ ਤਨ ਮੰਝਾ ॥੪॥੧੧॥
naanak laDhaa man tan manjhaa. ||4||11||
O’ Nanak, that person has realized God within his heart. ||4||11||
 ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਜੀਵ ਨੇ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ (ਵੱਸਦਾਪ੍ਰਭੂ ਲੱਭ ਲਿਆ ੧੧
 نانک لدھا من تن منّجھا ੧੧
  منجھا ۔ درست ۔ میں ۔ وچ۔
اے نانک الہٰی ملاپ سے دل کی بھٹکن ختم ہو جاتی ہے