Urdu-Page-365

ਏਹਾ ਭਗਤਿ ਜਨੁ ਜੀਵਤ ਮਰੈ ॥
ayhaa bhagat jan jeevat marai.
The true devotional worship is that by which one remains detached from the love for Maya while engaged in worldly chores,
 
ਅਸਲ ਭਗਤੀ ਇਹੀ ਹੈ ਕਿ ਮਨੁੱਖ ਦੁਨੀਆ ਦੀ ਕਿਰਤਕਾਰ ਕਰਦਾ ਹੋਇਆ ਹੀ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਲੋਂ ਅਛੋਹ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 ایہا بھگتِ جنُ جیِۄت مرےَ  
جن جیوت مرے ۔ بد کاریوں سے نجات دوران حیات۔
 حقیقی عبادت یہ ہے کہ دوران حیات انسان دنیاوی کاروبار کرتے ہوئے۔ دنیاوی دولت کی محبت سے اپنے آپ کو پاک رکھے

 ਗੁਰ ਪਰਸਾਦੀ ਭਵਜਲੁ ਤਰੈ ॥
gur parsaadee bhavjal tarai.
and by the Guru’s grace crosses over the terrible world-ocean of vices.
 
ਤੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਭਿਆਨਕ ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ (ਦੀਆਂ ਵਿਕਾਰਾਂ ਦੀਆਂ ਲਹਿਰਾਂਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 گُر پرسادیِ بھۄجلُ ترےَ  
بھوجل ترے ۔ دشوار گذار خوفناک سمندر تشبیح ہے ۔ انسانی زندگی کے لئے ۔
 
اور رحمت مرشدسے دنیاوی دشوار گذار راستے عبور کرئے

 ਗੁਰ ਕੈ ਬਚਨਿ ਭਗਤਿ ਥਾਇ ਪਾਇ ॥
gur kai bachan bhagat thaa-ay paa-ay.li8
The devotional worship done according to the Guru’s teachings is approved in God’s court,
 
ਗੁਰੂ ਦੇ ਉਪਦੇਸ਼ ਅਨੁਸਾਰ ਕੀਤੀ ਹੋਈ ਭਗਤੀ (ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਦਰ ਤੇਪਰਵਾਨ ਹੁੰਦੀ ਹੈ,
 گُر کےَ بچنِ بھگتِ تھاءِ پاءِ  
تھائے ٹھکانے (4) ۔ 
۔ سبق مرشد کے مطابق کی ہوئی عبادت قبول خدا ہوتی ہے اور خدا خود انسان کے دل میں بس جاتا ہے

 ਹਰਿ ਜੀਉ ਆਪਿ ਵਸੈ ਮਨਿ ਆਇ ॥੪॥
har jee-o aap vasai man aa-ay. ||4||
and then, the reverend God Himself comes to dwell in the mind. ||4||
 
ਤੇ ਪੂਜਯ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ  ਵੱਸਦਾ ਹੈ 
 ہرِ جیِءُ آپِ ۄسےَ منِ آءِ  
ہرجیؤ۔ خدا ۔
جو دل سے خودی مٹا دیتا ہے اس کا خدا سے ملاپ ہوتا ہے

 ਹਰਿ ਕ੍ਰਿਪਾ ਕਰੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਮਿਲਾਏ ॥
har kirpaa karay satguroo milaa-ay.
When God bestows mercy, He unites a person with the true Guru.
 
ਜਦ ਪਰਮਾਤਮਾ ਮੇਹਰ ਕਰਦਾ ਹੈਤਾਂ ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਸੱਚੇ ਗੁਰਾਂ ਨਾਲ ਜੋੜ ਦਿੰਦਾ ਹੈ
 ہرِ ک٘رِپا کرے ستِگُروُ مِلاۓ  
جس پر الہٰی کرم وعنایت ہوا سے ملاپ مرشد حاصل ہوتا ہے 

 ਨਿਹਚਲ ਭਗਤਿ ਹਰਿ ਸਿਉ ਚਿਤੁ ਲਾਏ ॥
nihchal bhagat har si-o chit laa-ay.
Only then he engages in unwavering devotion and attunes his mind to God.

ਉਹ ਨਾਹ ਡੋਲਣ ਵਾਲੀ ਭਗਤੀ ਕਰਦਾ ਹੈ ਤੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨਾਲ ਆਪਣਾ ਚਿੱਤ ਜੋੜੀ ਰੱਖਦਾ ਹੈ
 نِہچل بھگتِ ہرِ سِءُ چِتُ لاۓ  
جہچل۔ مستقل ۔ نہ دگمگانے والا۔ 
 
وہ گیر متزلزل عبادت وریاضت سنجیدہ اور مستقل مزاجی سے کرتا ہے

 ਭਗਤਿ ਰਤੇ ਤਿਨ੍ਹ੍ਹ ਸਚੀ ਸੋਇ ॥
bhagat ratay tinH sachee so-ay.
Everlasting is the glory of those who are imbued with worship of God.
ਜੋ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਭਗਤੀ ਵਿਚ ਰੰਗੇ ਜਾਂਦੇ ਹਨ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲੀ ਸੋਭਾ ਮਿਲਦੀ ਹੈ
 بھگتِ رتے تِن٘ہ٘ہ سچیِ سوءِ  
سوئے ۔ شہر 
الہٰی عشق و ریاضت سے اور اس میں محدیت سے انسان کو صدیوی عظمت و حشمت و شہرت نصیب ہوتی ہے

 ਨਾਨਕ ਨਾਮਿ ਰਤੇ ਸੁਖੁ ਹੋਇ ॥੫॥੧੨॥੫੧॥
naanak naam ratay sukh ho-ay. ||5||12||51||
O’ Nanak, imbued with God’s Name peace is attained. ||5||12||51||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮਰੰਗ ਵਿੱਚ ਰੰਗੇ ਹੋਇਆਂ ਨੂੰ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਮਿਲਦਾ ਹੈ ੧੨੫੧
 نانک نامِ رتے سُکھُ ہوءِ
۔ اے نانک الہٰی نام اور سچ اپنانے سے سکھ ملتا ہے ۔ 
 

 ਆਸਾ ਘਰੁ ੮ ਕਾਫੀ ਮਹਲਾ ੩ 
aasaa ghar 8 kaafee mehlaa 3
Raag Aasaa, Kaafi, Eighth Beat, Third Guru:
 آسا گھرُ  کاپھیِ مہلا  
میرا۔ مالک۔ آقا۔ داتار واحد ہے ۔ اس کے علاوہ دوسرا کوئی نہیں وحدتاً لا شریق ہو۔ قرآن شریف

 ੴ ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ॥
ik-oNkaar satgur parsaad.
One eternal God, realized by the grace of the true Guru.
 
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
  ستِگُر پ٘رسادِ  
ایک لازوال خدا ، سچے گرو کے فضل سے احساس ہوا

 ਹਰਿ ਕੈ ਭਾਣੈ ਸਤਿਗੁਰੁ ਮਿਲੈ ਸਚੁ ਸੋਝੀ ਹੋਈ ॥
har kai bhaanai satgur milai sach sojhee ho-ee.
By the Pleasure of God’s Will, one meets the True Guru and attains understanding about living righteously.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਅਨੁਸਾਰ ਗੁਰੂ ਮਿਲਦਾ ਹੈ (ਜਿਸ ਨੂੰ ਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪੈਂਦਾ ਹੈਉਸ ਨੂੰਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਪ੍ਰਭੂ ਮਿਲ ਪੈਂਦਾ ਹੈ, (ਤੇ ਉਸ ਨੂੰ ਸਹੀ ਜੀਵਨਜੁਗਤਿ ਦੀਸਮਝ  ਜਾਂਦੀ ਹੈ 
 ہرِ کےَ بھانھےَ ستِگُرُ مِلےَ سچُ سوجھیِ ہوئیِ  
بھانے ۔ رضا ۔ 
الہٰی رضاؤ خوشنودی سے سچا مرشد ملتا ہے اور سچی سمجھ آتی ہے

 ਗੁਰ ਪਰਸਾਦੀ ਮਨਿ ਵਸੈ ਹਰਿ ਬੂਝੈ ਸੋਈ ॥੧॥
gur parsaadee man vasai har boojhai so-ee. ||1||
By the Guru’s Grace, one comes to understand about God’s presence in the heart. ||1||
 
ਜਿਸ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਪਰਮਾਤਮਾ  ਵੱਸਦਾ ਹੈਉਹੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨਾਲ ਸਾਂਝ ਪਾਂਦਾ ਹੈ l 
 گُر پرسادیِ منِ ۄسےَ ہرِ بوُجھےَ سوئیِ  
سوئی ۔ وہی 01) سوہ۔ خاوند۔ مالک۔آقا
۔ رحمت مرشد سے خدا دل میں بستا ہے اور اسے خدا کی پہچان ہوتی ہے

 ਮੈ ਸਹੁ ਦਾਤਾ ਏਕੁ ਹੈ ਅਵਰੁ ਨਾਹੀ ਕੋਈ ॥
mai saho daataa ayk hai avar naahee ko-ee.
God alone is my Master and bestower of all gifts; I do not depend on anyone else.
 
ਇਕ ਪਰਮਾਤਮਾ ਹੀ ਮੇਰਾ ਖਸਮਰਾਖਾ ਹੈ ਤੇ ਮੈਨੂੰ ਸਭ ਦਾਤਾਂ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈਉਸ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਮੇਰਾ ਹੋਰ ਕੋਈ ਨਹੀਂ ਹੈ 
 مےَ سہُ داتا ایکُ ہےَ اۄرُ ناہیِ کوئیِ  
 وحدتاً لا شریک ہے۔ قرآن شریف

 ਗੁਰ ਕਿਰਪਾ ਤੇ ਮਨਿ ਵਸੈ ਤਾ ਸਦਾ ਸੁਖੁ ਹੋਈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
gur kirpaa tay man vasai taa sadaa sukh ho-ee. ||1|| rahaa-o.
When through the Guru’s grace, God’s presence in the heart is realized, then there is peace forever. ||1||Pause||
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਮੇਹਰ ਨਾਲ ਜਦੋਂ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਮਨ ਵਿਚ  ਵੱਸਦਾ ਹੈਤਦੋਂ ਸਦਾ ਲਈ ਆਨੰਦ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 گُر کِرپا تے منِ ۄسےَ تا سدا سُکھُ ہوئیِ  رہاءُ  
۔ رحمت مرشد سے دل میں بستا ہے ۔ جس سے صدیوی سکھ ہوتا ہے

 ਇਸੁ ਜੁਗ ਮਹਿ ਨਿਰਭਉ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਹੈ ਪਾਈਐ ਗੁਰ ਵੀਚਾਰਿ ॥
 is jug meh nirbha-o har naam hai paa-ee-ai gur veechaar.
 In this world only God’s Name can make one free from all worldly fears; but Naam is realized only by reflecting on the Guru’s teachings.
 
ਇਸ ਜਗਤ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਹੀ ਹੈ ਜੋ ਜਗਤ ਦੇ ਸਾਰੇ ਡਰਾਂ ਤੋਂ ਬਚਾਉਣ ਵਾਲਾ ਹੈਪਰ ਇਹ ਨਾਮ ਗੁਰੂ ਦੀ ਦੱਸੀ ਹੋਈ ਵਿਚਾਰ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 اِسُ جُگ مہِ نِربھءُ ہرِ نامُ ہےَ پائیِئےَ گُر ۄیِچارِ  
نربھؤ۔ بیخوف۔ ہرنام۔ الہٰی نام۔ گرویچار۔ سبق مرشد سے ۔ 
۔
 اس عالم میں اور اس دور میں الہٰی نام بیخوف ہے۔ جو سبق مرشد سے حاصل ہوتا ہے

 ਬਿਨੁ ਨਾਵੈ ਜਮ ਕੈ ਵਸਿ ਹੈ ਮਨਮੁਖਿ ਅੰਧ ਗਵਾਰਿ ॥੨॥
bin naavai jam kai vas hai manmukh anDh gavaar. ||2||
Without God’s Name, the foolish self-conceited person, blind in the love for Maya remains under the control of the fear of death. ||2||
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਤੋਂ ਬਿਨਾਮੂਰਖ ਅਤੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਅੰਨ੍ਹੀਆਪਣੇ ਮਨ ਦੇ ਪਿੱਛੇ ਤੁਰਨ ਵਾਲੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀਆਤਮਕ ਮੌਤ ਦੇ ਕਾਬੂ ਵਿਚ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ 
 بِنُ ناۄےَ جم کےَ ۄسِ ہےَ منمُکھِ انّدھ گۄارِ  
وس۔ اختیار ۔ قبضے میں۔ اندھ گبار۔ نہایت تاریکی ۔ مراد جہالت میں(2)
۔ بغیر سچ اور نام الہٰی کے کوتوال خدا کے دائرہ اختیار میں ہے ۔ انسان خود پسند اندھیرے اور تاریکی میں گذر رہا ہے اور جہالت ہے

 ਹਰਿ ਕੈ ਭਾਣੈ ਜਨੁ ਸੇਵਾ ਕਰੈ ਬੂਝੈ ਸਚੁ ਸੋਈ ॥
har kai bahane jan sayvaa karai boojhai sach so-ee.
The person who while living according to God’s will serves God by meditating on His Name, that person alone realizes the eternal God.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਵਿਚ ਚੱਲਦਾ ਹੈ ਉਹੀ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸੇਵਾਭਗਤੀ ਕਰਦਾ ਹੈ ਉਹੀ ਉਸ ਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਮਝਦਾ ਹੈ
 ہرِ کےَ بھانھےَ جنُ سیۄا کرےَ بوُجھےَ سچُ سوئیِ  
بوجہے سچ سوئی ۔ حقیقت کو وہی سمجھتا ہے ۔ 
جوالہٰی رضا میں راضی رہتا ہے اور خدمت سر انجام دیتا ہے وہی حقیقت کو سمجھتا ہے

 ਹਰਿ
ਕੈ ਭਾਣੈ ਸਾਲਾਹੀਐ ਭਾਣੈ ਮੰਨਿਐ ਸੁਖੁ ਹੋਈ ॥੩॥

har kai bhaanai salaahee-ai bhaanai mani-ai sukh ho-ee. ||3||
We should sing God’s praises, while living in accordance with God’s will; true peace is attained by gladly obeying His command. ||3||
 
ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਵਿਚ ਤੁਰਿਆਂ ਹੀ ਉਸ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਹੋ ਸਕਦੀ ਹੈ ਉਸ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਵਿਚ ਤੁਰੀਏ ਤਾਂ ਹੀ ਸੁਖ ਪ੍ਰਾਪਤ ਹੁੰਦਾ ਹੈ ()
 ہرِ کےَ بھانھےَ سالاہیِئےَ بھانھےَ منّنِئےَ سُکھُ ہوئیِ  
بھانے منیئے ۔ رضا قبول کرنے سے (3)
۔ الہٰی رضا میں جو صفت صلاح کرتا ہے اور الہٰی رضا میں راضی رہتا ہے ۔ اُسے سکھ ملتا ہے

 ਹਰਿ ਕੈ ਭਾਣੈ ਜਨਮੁ ਪਦਾਰਥੁ ਪਾਇਆ ਮਤਿ ਊਤਮ ਹੋਈ ॥
har kai bhaanai janam padaarath paa-i-aa mat ootam ho-ee.
By obeying God’s will, the intellect becomes sublime and one attains the purpose of human life.
 
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਵਿਚ ਤੁਰ ਕੇ ਮਨੁੱਖਾ ਜਨਮ ਦਾ ਮਨੋਰਥ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲਿਆ ਉਸ ਦੀ ਅਕਲ ਵਧੀਆ ਬਣ ਗਈ
 ہرِ کےَ بھانھےَ جنمُ پدارتھُ پائِیا متِ اوُتم ہوئیِ  
پدارتھ۔ قیمتی نعمت۔ تحفہ۔ اُتم ۔ بلند روحانی حالت۔ 
۔ الہٰی رضا سے اس زندگی کی نعمت ملتی ہے ۔ بلند عقل و شعور حاصل ہوتا ہے

 ਨਾਨਕ ਨਾਮੁ ਸਲਾਹਿ ਤੂੰ ਗੁਰਮੁਖਿ ਗਤਿ ਹੋਈ ॥੪॥੩੯॥੧੩॥੫੨॥
nanak naam salaahi tooN gurmukh gat ho-ee. ||4||39||13||52||
O’ Nanak, sing the praises of God by following the Guru’s teachings and you shall be saved from the vices.||4||39||13||52||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਤੂੰ ਨਾਮ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤ ਸ਼ਲਾਘਾ ਕਰ ਗੁਰਾਂ ਦੇ ਰਾਹੀਂ ਤੂੰ ਮੁਕਤ ਹੋ ਜਾਵੇਗਾਂ ੩੯੧੩੫੨
 نانک نامُ سلاہِ توُنّ گُرمُکھِ گتِ ہوئیِ 
گورمکھ سایہ مرشد ۔ گت۔ زندگی کی پاک صورت 
۔ 
اے نانک الہٰی نام یا سچ کی صفت صلاح کر اس سے بلند روحانیت حاصل ہوتی ہے

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੪ ਘਰੁ ੨ 
aasaa mehlaa 4 ghar 2
Raag Aasaa, Second Beat, Fourth Guru:
 آسا مہلا  گھرُ  
 ੴ ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ॥
 ik-oNkaar satgur parsaad.
 One eternal God. Realized by the grace of the True Guru:
 
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
  ستِگُر پ٘رسادِ 
ایک لازوال خدا ، سچے گرو کے فضل سے احساس ہوا

 ਤੂੰ ਕਰਤਾ ਸਚਿਆਰੁ ਮੈਡਾ ਸਾਂਈ ॥
tooN kartaa sachiaar maidaa saaN-ee.
O’ God, You are the eternal Creator of the universe and You are my Master.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਤੂੰ ਸੱਚਾ ਸਿਰਜਣਹਾਰ ਅਤੇ ਮੇਰਾ ਮਾਲਕ ਹੈਂ
 توُنّ کرتا سچِیارُ میَڈا ساںئیِ  
کرتا۔ کرنے والا۔ سچیار۔ خوش اخلاق ۔ مینڈا۔ میرا۔ سائیں مالک۔ آقا ۔ 
اے خدا تو عالم کو پیدا کرنے والا ہے ، خوش اخلاق ہے اور میراآقا ہے

 ਜੋ ਤਉ ਭਾਵੈ ਸੋਈ ਥੀਸੀ ਜੋ ਤੂੰ ਦੇਹਿ ਸੋਈ ਹਉ ਪਾਈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
jo ta-o bhaavai so-ee theesee jo tooN deh so-ee ha-o paa-ee. ||1|| rahaa-o.
That which is pleasing to You, comes to pass. Whatever You give, that is what I receive. ||1||Pause||
 
ਉਹੀ ਹੁੰਦਾ ਹੈਜਿਹੜਾ ਤੈਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲਗਦਾ ਹੈ ਮੈਂ ਓਹੀ ਕੁਛ ਪਰਾਪਤ ਕਰਦਾ ਹਾਂਜੋ ਕੁਛ ਤੂੰ ਮੈਨੂੰ ਦਿੰਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 جو تءُ بھاۄےَ سوئیِ تھیِسیِ جو توُنّ دیہِ سوئیِ ہءُ پائیِ  رہاءُ  
جوتوؤبھاؤ۔ جیسا تو چاہتا ہے ۔ سوئی ۔ وہی تھیسی ۔ ہوتا ہے ۔ جو تو دیہہ۔ جو تو دیتا ہے (1) رہاؤ۔ 
 جو تو چاہتا ہے وہی ہوتا ہے ۔ جو تو دیتا ہے وہی مجھے ملتا ہے ۔ رہاؤ(1)

 ਸਭ ਤੇਰੀ ਤੂੰ ਸਭਨੀ ਧਿਆਇਆ ॥
sabh tayree tooN sabhnee Dhi-aa-i-aa.
O’ God, the entire universe is Your creation and all meditate on You.
 
(ਹੇ ਪ੍ਰਭੂ!) ਸਾਰੀ ਲੁਕਾਈ ਤੇਰੀ ਰਚੀ ਹੋਈ ਹੈਸਭ ਜੀਵਾਂ ਨੇ ਔਖੇ ਸੌਖੇ ਵੇਲੇ ਤੈਨੂੰ ਹੀ ਸਿਮਰਦੇ ਹਨ 
 سبھ تیریِ توُنّ سبھنیِ دھِیائِیا  
دھیایئیا ۔ یاد کیا ۔
۔ ساری مخلوقات تیری ہے اور سارے تجھے یاد کرتے ہیں

 ਜਿਸ ਨੋ ਕ੍ਰਿਪਾ ਕਰਹਿ ਤਿਨਿ ਨਾਮ ਰਤਨੁ ਪਾਇਆ ॥
jis no kirpaa karahi tin naam ratan paa-i-aa.
He alone, attains the jewel- like Naam whom You bless with Your mercy.
 
ਜਿਸ ਉਤੇ ਤੂੰ ਮੇਹਰ ਕਰਦਾ ਹੈਂ ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਤੇਰਾ ਨਾਰਤਨ ਨੂੰ ਪਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ 
 جِس نو ک٘رِپا کرہِ تِنِ نام رتنُ پائِیا  
نام رتن۔ قیمتی نام۔
۔ جس پر تیری کرم و عنایت و رحمت ہے قیمتی سچا نام پاتا ہے

 ਗੁਰਮੁਖਿ ਲਾਧਾ ਮਨਮੁਖਿ ਗਵਾਇਆ ॥
gurmukh laaDhaa manmukh gavaa-i-aa.
The Guru’s followers attain It and the the self-willed people lose It.
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪਿਆ ਜੀਵ ਨਾਮ ਪਰਾਪਤ ਕਰ ਲੈਂਦੇ ਹਨ ਅਤੇ ਆਪ ਹੁਦਰੇ ਜੀਵ ਇਸ ਨੂੰ ਗੁਆ ਬੈਠਦੇ ਹਨ 
 گُرمُکھِ لادھا منمُکھِ گۄائِیا  
لادھا۔ حاصل کیا۔
۔ مرید مرشد پاتا ہے ۔ مرید من گنواتا ہے

 ਤੁਧੁ ਆਪਿ ਵਿਛੋੜਿਆ ਆਪਿ ਮਿਲਾਇਆ ॥੧॥
tuDh aap vichhorhi-aa aap milaa-i-aa. ||1||
You Yourself separate the self-willed people from You, and You Yourself unite the Guru’s followers with You. ||1||
 
ਮਨਮੁਖ ਨੂੰ ਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਆਪਣੇ ਤੋਂ ਵਿਛੋੜ ਰੱਖਿਆ ਹੈ ਤੇ ਗੁਰਮੁਖਿ ਨੂੰ ਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਆਪਣੇ ਵਿਚ ਜੋੜਿਆ ਹੋਇ ਹੈ  
 تُدھُ آپِ ۄِچھوڑِیا آپِ مِلائِیا  
۔ تو نے خود ہی جدا کیا ہے اور خود ہی ملاتا ہے 

 ਤੂੰ ਦਰੀਆਉ ਸਭ ਤੁਝ ਹੀ ਮਾਹਿ ॥
tooN daree-aa-o sabh tujh hee maahi.
You are like a mighty river of life and all the creatures are living in You.
 
(ਹੇ ਪ੍ਰਭੂ!) ਤੂੰ (ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦਾ ਇਕ ਵੱਡਾਦਰੀਆ ਹੈਂਸਾਰੀ ਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀ ਤੇਰੇ ਵਿਚ (ਜੀਊ ਰਹੀਹੈ,
 توُنّ دریِیاءُ سبھ تُجھ ہیِ ماہِ  
تو ایک سمندر کی مانند ہے ۔ اور سارا عالم تیرے اندر مجذوب ہہ

 ਤੁਝ ਬਿਨੁ ਦੂਜਾ ਕੋਈ ਨਾਹਿ ॥
 tujh bin doojaa ko-ee naahi.
 
Other than You, there is no one at all.
 
ਤੈਥੋਂ ਬਿਨਾ ਕੋਈ ਹੋਰ ਦੂਜੀ ਹਸਤੀ ਨਹੀਂ ਹੈ
 تُجھ بِنُ دوُجا کوئیِ ناہِ  
۔ تیرے بغیر کوئی دوسری ایسی ہستی نہیں۔

 ਜੀਅ ਜੰਤ ਸਭਿ ਤੇਰਾ ਖੇਲੁ ॥
jee-a jant sabh tayraa khayl.
All beings and creatures of the universe are part of Your play.
 
(ਜਗਤ ਦੇ ਇਹਸਾਰੇ ਜੀਅ ਜੰਤ ਤੇਰਾ (ਰਚਿਆਤਮਾਸ਼ਾ ਹੈ
 جیِء جنّت سبھِ تیرا کھیلُ  
ساری مخلوقات تیرا ایک کھیل ہے ۔ 

 ਵਿਜੋਗਿ ਮਿਲਿ ਵਿਛੁੜਿਆ ਸੰਜੋਗੀ ਮੇਲੁ ॥੨॥
vijog mil vichhurhi-aa sanjogee mayl. ||2||
It is by Your Will that some are separated from You and others who were separated reunite with You. ||2||
 
ਵਿਜੋਗ ਦੇ ਕਾਰਣ ਮਿਲਿਆ ਹੋਇਆ ਜੀਵ ਵਿਛੁੜ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਤੇ ਸੰਜੋਗ ਦੇ ਕਾਰਨ ਮੁੜ ਮਿਲਾਪ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲੈਂਦਾ ਹੈ 
 ۄِجوگِ مِلِ ۄِچھُڑِیا سنّجوگیِ میلُ  
جدائی کی وجہ سے جاندار جدا ہو جاتا ہے اور ملاپ سے مل جاتا ہے ۔ 

 ਜਿਸ ਨੋ ਤੂ ਜਾਣਾਇਹਿ ਸੋਈ ਜਨੁ ਜਾਣੈ ॥
jis no too jaanaa-ihi so-ee jan jaanai.
O’ God, only that person understands (You and Your laws) whom You make to understand,
 
(ਹੇ ਪ੍ਰਭੂ!) ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਤੂੰ ਸਮਝ ਬਖ਼ਸ਼ਦਾ ਹੈਂ ਉਹੀ ਮਨੁੱਖ ਤੈਨੂੰ ਸਮਝਦਾ ਹੈ,
 جِس نو توُ جانھائِہِ سوئیِ جنُ جانھےَ  
جانایئہہ۔ وہی جانتا ہے ۔ جن انسان
اے خدا جسے تو سمجھ عنایت کرتا ہے وہی سمجھ پاتا ہے

 ਹਰਿ ਗੁਣ ਸਦ ਹੀ ਆਖਿ ਵਖਾਣੈ ॥
har gun sad hee aakh vakhaanai.
and only that person always utters and describes God’s virtues.
ਤੇ ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਹਰਿਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣ ਸਦਾ ਆਖ ਕੇ ਬਿਆਨ ਕਰਦਾ ਹੈ
 ہرِ گُنھ سد ہیِ آکھِ ۄکھانھےَ  
اور الہٰی اوصاف کی تشریح کرکے بیان کرتا ہے ۔

 ਜਿਨਿ ਹਰਿ ਸੇਵਿਆ ਤਿਨਿ ਸੁਖੁ ਪਾਇਆ ॥
jin har sayvi-aa tin sukh paa-i-aa.
One who serves God by remembering Him, attains peace.
 
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਸੇਵਾਭਗਤੀ ਕੀਤੀ ਉਸ ਨੇ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਪਰਾਪਤ ਹੋਇਆ ਹੈ 
 جِنِ ہرِ سیۄِیا تِنِ سُکھُ پائِیا  
جو خدمت خدا کرتا ہے وہ آرام پاتا ہے

 ਸਹਜੇ ਹੀ ਹਰਿ ਨਾਮਿ ਸਮਾਇਆ ॥੩॥
sehjay hee har naam samaa-i-aa. ||3||
That person intuitively merges in God’s Name. ||3||
 
ਉਹ ਸੁਖੈਨ ਹੀ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦੇ ਨਾਮ ਅੰਦਰ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ  
 سہجے ہیِ ہرِ نامِ سمائِیا  
نام سمایئیا نام میتن محو ہوا (3)
اور قدرتی طور پر نام میں محو ہو جاتا ہے ۔ 

 ਤੂ ਆਪੇ ਕਰਤਾ ਤੇਰਾ ਕੀਆ ਸਭੁ ਹੋਇ ॥
too aapay kartaa tayraa kee-aa sabh ho-ay.
You Yourself are the Creator; by Your doing, all things come to pass.
 
ਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਰਚਨਹਾਰ ਹੈਂ ਅਤੇ ਸਭ ਕੁਝ ਤੇਰਾ ਕੀਤਾ ਹੀ ਹੋ ਰਿਹਾ ਹੈ l
 توُ آپے کرتا تیرا کیِیا سبھُ ہوءِ  
کرتا۔ کارساز، کرتاراور دوسرا ۔ دیگر ۔
تو کار ساز ہے تیرا کیا سارا ہوتا ہے

 ਤੁਧੁ ਬਿਨੁ ਦੂਜਾ ਅਵਰੁ ਨ ਕੋਇ ॥
 tuDh bin doojaa avar na ko-ay.
 Without You, there is no other at all who can do anything.
 
ਤੈਥੋਂ ਬਿਨਾ ਕੋਈ ਹੋਰ ਕੁਝ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਨਹੀਂ ਹੈ
 تُدھُ بِنُ دوُجا اۄرُ ن کوءِ 
تیرے بغیر کوئی دوسرا نہیں جو کچھ بھی کر سکے

 ਤੂ ਕਰਿ ਕਰਿ ਵੇਖਹ ਜਾਣਹਿ ਸੋਇ ॥
too kar kar vaykheh jaaneh so-ay.
After creating the world again and again, You look after it and know everything about it.
 
ਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਜਗਤਰਚਨਾ ਕਰ ਕਰ ਕੇ ਸਭ ਦੀ ਸੰਭਾਲ ਕਰਦਾ ਹੈਂਆਪ ਹੀ ਇਸ ਸਾਰੇ ਭੇਤ ਨੂੰ ਜਾਣਦਾ ਹੈਂ
 توُ کرِ کرِ ۄیکھہِ جانھہِ سوءِ  
تو کرکے نگرانی کرتا ہے اور اس سارے کو سمجھتا ہے

 ਜਨ ਨਾਨਕ ਗੁਰਮੁਖਿ ਪਰਗਟੁ ਹੋਇ ॥੪॥੧॥੫੩॥
jan naanak gurmukh pargat ho-ay. ||4||1||53||
O’ Nanak, this becomes apparent only to a Guru’s follower. ||4||1||53||
 
ਹੇ ਦਾਸ ਨਾਨਕਗੁਰੂ ਦੇ ਸਨਮੁਖ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਇਹ ਸਾਰੀ ਗੱਲ ਸਮਝ ਵਿਚ  ਜਾਂਦੀ ਹੈ ੫੩ ੫੩ 
جن نانک گُرمُکھِ پرگٹُ ہوءِ
پرگٹ۔ظاہر
 نانک مرشد کے وسیلے سے ساری عیان ہو جاتی ہے ۔ سمجھ آجاتی ہے