Urdu-Page-363

ਤਨੁ ਮਨੁ ਅਰਪੇ ਸਤਿਗੁਰ ਸਰਣਾਈ ॥
tan man arpay satgur sarnaa-ee.
He dedicates his mind and body to the true Guru and seeks his sanctuary.
 
ਉਹ ਆਪਣਾ ਮਨ ਆਪਣਾ ਸਰੀਰ ਗੁਰੂ ਦੇ ਹਵਾਲੇ ਕਰ ਕੇ ਤੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 تنُ منُ ارپے ستِگُر سرنھائیِ  
ارپے۔ بھینٹ کرئے ۔ سرنائی ۔پناہ۔
اور دل و جان سے سچے مرشد کی بھینٹ کر دیتا ہے ۔

 ਹਿਰਦੈ ਨਾਮੁ ਵਡੀ ਵਡਿਆਈ ॥
hirdai naam vadee vadi-aa-ee.
His greatest glory is that he has God’s name enshrined in his heart.
 
ਉਸ ਦੀ ਮਹਾਨ ਵਿਸ਼ਾਲਤਾ ਇਹ ਹੈਕਿ ਉਸ ਦੇ ਮਨ ਅੰਦਰ ਹਰੀ ਦਾ ਨਾਮ ਹੈ
 ہِردےَ نامُ ۄڈیِ ۄڈِیائیِ  
ہردے ۔ دل میں۔ وڈیائی۔ عطمت۔۔ شہرت۔
دل میں الہٰی نام اس کی عظمت ہے ۔

 ਸਦਾ ਪ੍ਰੀਤਮੁ ਪ੍ਰਭੁ ਹੋਇ ਸਖਾਈ ॥੧॥
sadaa pareetam parabh ho-ay sakhaa-ee. ||1||
The Beloved God is his constant companion. ||1||
 
ਪਿਆਰਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਹਮੇਸ਼ਾਂ ਲਈ ਉਸ ਦਾ ਸਾਥੀਮਿੱਤਰ ਹੈ
 سدا پ٘ریِتمُ پ٘ربھُ ہوءِ سکھائیِ  
سکھائی ۔ سکھائی ۔ ساتھی ۔ دوست۔
ہمیشہ پیار خدا اس کا دوست اور ساتھی رہتا ہے ۔ (1)

 ਸੋ ਲਾਲਾ ਜੀਵਤੁ ਮਰੈ ॥
so laalaa jeevat marai.
He alone is the true servant of God who remains detached from the worldly enticements while performing the worldly responsibilities.
 
ਅਸਲੀ ਦਾਸ ਉਹ ਹੈ ਜੋ ਦੁਨੀਆ ਦੀ ਕਿਰਤ ਕਰਦਾ ਹੋਇਆ ਦੁਨੀਆ ਦੀਆਂ ਵਾਸਨਾਂ ਵਲੋਂ ਮਰਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ
 سو لالا جیِۄتُ مرےَ  
(1)جیوت مرئے ۔ دوران حیات خواہشات ختم کرئے ۔
وہ اکیلا ہی خدا کا حقیقی بندہ ہے جو دنیاوی ذمہ داریوں کو نبھاتے ہوئے دنیاوی فتنوں سے علیحدہ رہتا ہے

 ਸੋਗੁ ਹਰਖੁ ਦੁਇ ਸਮ ਕਰਿ ਜਾਣੈ ਗੁਰ ਪਰਸਾਦੀ ਸਬਦਿ ਉਧਰੈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
sog harakh du-ay sam kar jaanai gur parsaadee sabad uDhrai. ||1|| rahaa-o.
He looks upon pleasure and pain alike. By Guru’s Grace, remaining focused on the Guru’s word, he is saved from the worldly enticements and vices.
 
ਉਹ ਖ਼ੁਸ਼ੀ ਗ਼ਮੀ ਦੋਹਾਂ ਨੂੰ ਇਕੋ ਜਿਹਾ ਸਮਝਦਾ ਹੈਤੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਉਹ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਵਿਚ ਜੁੜ ਕੇ ਦੁਨੀਆ ਦੀਆਂ ਵਾਸਨਾਂ ਤੋਂ ਬਚਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ l
 سوگُ ہرکھُ دُءِ سم کرِ جانھےَ گُر پرسادیِ سبدِ اُدھرےَ  رہاءُ  
سوگ۔ افسوس ۔برکھ۔ خوشی ۔ سم ۔ برابر ۔ گرپرسادی۔ رحمت مرشد سے ۔ سبد۔ سبق نصیحت ۔ کلام۔ ادھرے ۔ بچتاہے (1) رہاؤ۔ کرنی۔ اعمال ۔
وہ خوشی اور تکلیف کو یکساں دیکھتا ہے۔ گرو کے فضل سے ، گرو کے کلام پر مرکوز رہ کر ، وہ دنیاوی لالچوں اور برائیوں سے نجات پا گیا

 ਕਰਣੀ ਕਾਰ ਧੁਰਹੁ ਫੁਰਮਾਈ ॥
karnee kaar Dharahu furmaa-ee.
He does his deeds according to God’s Primal Command.
 
ਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਆਦੀ ਰਜ਼ਾ ਅਨੁਸਾਰ ਕਰਮ ਕਮਾਉਂਦਾ ਹੈ
 کرنھیِ کار دھُرہُ پھُرمائیِ  
کار۔ کیرت۔ کام دھرہو۔ الہٰی درگاہ سے ۔ فرمائی ۔ احکام۔ صادر ہے۔
خدا کا فرمان فکو کار ہے ۔

 ਬਿਨੁ ਸਬਦੈ ਕੋ ਥਾਇ ਨ ਪਾਈ ॥
bin sabdai ko thaa-ay na paa-ee.
Without attuning to the Guru’s word no one is approved in God’s court.
 
ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ (ਵਿਚ ਜੁੜਨਤੋਂ ਬਿਨਾ ਕੋਈ ਮਨੁੱਖ (ਉਸ ਦੇ ਦਰ ਤੇਕਬੂਲ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦਾ
 بِنُ سبدےَ کو تھاءِ ن پائیِ  
بن سبدے ۔ بغیر کلام۔ سبق ۔ تھاہ ۔ ٹھکانہ ۔
مگر سبق کے بغیر اور کلام کے بغیر حقیقت اور اصلیت کا پتہ نہیں چلتا۔

 ਕਰਣੀ ਕੀਰਤਿ ਨਾਮੁ ਵਸਾਈ ॥
 karnee keerat naam vasaa-ee.
 By singing God’s praises, such a person enshrines His Name in the heart.
 
ਸੇਵਕ ਉਸ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਕਰਦਾ ਹੈ ਉਸ ਦਾ ਨਾਮ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਵਸਾਂਦਾ ਹੈ 
 کرنھیِ کیِرتِ نامُ ۄسائیِ  
کیرت۔صفت صلاح۔
خدا کی حمد گاتے ہوئے ، ایسا شخص اپنے نام کو دل میں داخل کرتا ہے

 ਆਪੇ ਦੇਵੈ ਢਿਲ ਨ ਪਾਈ ॥੨॥
aapay dayvai dhil na paa-ee. ||2||
Then of His own accord, God gives him the gift of Naam without any delay. ||2||
ਇਹ ਦਾਤਿ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਆਪਣੇ ਦਾਸ ਨੂੰ ਦੇਂਦਾ ਹੈ ਤੇ ਦੇਂਦਿਆਂ ਚਿਰ ਨਹੀਂ ਲਾਂਦਾ 
 آپے دیۄےَ ڈھِل ن پائیِ  
جوخدا خود دیتا ہے دیر نہیں کرتا۔

 ਮਨਮੁਖਿ ਭਰਮਿ ਭੁਲੈ ਸੰਸਾਰੁ ॥
manmukh bharam bhulai sansaar.
A self-conceited person is lost in worldly illusions.
 
ਮਨਮੁਖਿ ਜਗਤ ਮਾਇਆ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਵਿਚ ਪੈ ਕੇ ਕੁਰਾਹੇ ਪਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ l
 منمُکھِ بھرمِ بھُلےَ سنّسارُ  
منمکھ۔ میرد من۔ بھرم۔ وہم وگمان۔
 وہم گمان میں تمام عالم بھول رہا ہے ۔

 ਬਿਨੁ ਰਾਸੀ ਕੂੜਾ ਕਰੇ ਵਾਪਾਰੁ ॥
bin raasee koorhaa karay vaapaar.
Without the wealth of Naam, he makes false trade of worldly things.
 
ਪੂੰਜੀ ਦੇ ਬਾਝੋਂ ਉਹ ਝੂਠਾ ਵਣਜ ਕਰਦਾ ਹੈ
 بِنُ راسیِ کوُڑا کرے ۄاپارُ  
بغیر سرمائے کے جھوت کی سودا گری کر رہا ہے 

 ਵਿਣੁ ਰਾਸੀ ਵਖਰੁ ਪਲੈ ਨ ਪਾਇ ॥
vin raasee vakhar palai na paa-ay.
Without the wealth of Naam, he cannot receive the commodity of divine bliss.
 
ਜਿਸ ਦੇ ਪਾਸ ਸਰਮਾਇਆ ਨਹੀਂ ਉਸ ਨੂੰ ਸੌਦਾ ਨਹੀਂ ਮਿਲ ਸਕਦਾ
 ۄِنھُ راسیِ ۄکھرُ پلےَ ن پاءِ  
راسی۔پونجی۔ سرمایہ۔ وکھر۔ سودا۔ پلے۔ دامن۔ جھولی۔
مگر بغیر سرمائے کوئی سودا نہیں دیتا

 ਮਨਮੁਖਿ ਭੁਲਾ ਜਨਮੁ ਗਵਾਇ ॥੩॥
manmukh bhulaa janam gavaa-ay. ||3||
Therefore, being strayed the egocentric wastes away his life. ||3||
ਭੁੱਲਿਆ ਹੋਇਆ ਆਪਹੁਦਰਾ ਇਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਆਪਣਾ ਜੀਵਨ ਬਰਬਾਦ ਕਰਦਾ ਹੈ 
 منمُکھِ بھُلا جنمُ گۄاءِ  
کوا۔ جھوٹا۔جنمگوائے۔ زندگی بیکار۔ ضائع کر لیتا ہے ۔ (3)
مرید من بھول اور غفلت میں زندگی ضائع وبرباد کر تاہے ۔ (3)

 ਸਤਿਗੁਰੁ ਸੇਵੇ ਸੁ ਲਾਲਾ ਹੋਇ ॥
satgur sayvay so laalaa ho-ay.
One who follows the true Guru’s teachings is the true servant of God.
 
ਅਸਲੀ ਦਾਸ ਉਹੀ ਹੈ ਜੋ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਂਦਾ ਹੈ l
 ستِگُرُ سیۄے سُ لالا ہوءِ  
ستگر سیوے ۔ جو سچے مرشد کی خدمت کرتا ہے ۔ لالہ ہوئے ۔ وہی غلام یا خدمتگار ہے ۔
خدمتگار مرشد ہی غلام ہے

 ਊਤਮ ਜਾਤੀ ਊਤਮੁ ਸੋਇ ॥
ootam jaatee ootam so-ay.
His social status is exalted and his reputation is exalted.
ਉਹੀ ਉੱਚੀ ਹਸਤੀ ਵਾਲਾ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਉਹੀ ਉੱਚੇ ਜੀਵਨ ਵਾਲਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
 اوُتم جاتیِ اوُتمُ سوءِ  
اُتم بلند عظمت جاتی ۔ ہستی۔ سوئے ۔ شہرت۔
وہ بلند ہستی اور بلند عظمت ہے۔

 ਗੁਰ ਪਉੜੀ ਸਭ ਦੂ ਊਚਾ ਹੋਇ ॥
 gur pa-orhee sabh doo oochaa ho-ay.
 Climbing the Guru’s Ladder of service and devotion, he becomes the most exalted of all.
 
ਗੁਰੂ ਦੀ (ਦਿੱਤੀ ਹੋਈ ਨਾਮਸਿਮਰਨ ਦੀਪਉੜੀ ਦਾ ਆਸਰਾ ਲੈ ਕੇ ਉਹ ਸਭਨਾਂ ਨਾਲੋਂ ਉੱਚਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 گُر پئُڑیِ سبھ دوُ اوُچا ہوءِ  
پوڑی ۔ زینہ۔ اوچا۔ بلند عظمت ۔
مرشد بلند عظمت کے لئے ایک زینہ ہے جو انسان بلند حیثیت و عظمت ہو جاتا ہے ۔

 ਨਾਨਕ ਨਾਮਿ ਵਡਾਈ ਹੋਇ ॥੪॥੭॥੪੬॥
naanak naam vadaa-ee ho-ay. ||4||7||46||
O’ Nanak, greatness is attained through meditation on God’s Name. ||4||7||46||
ਹੇ ਨਾਨਕਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਨ ਵਿਚ ਹੀ ਇੱਜ਼ਤ ਹੈ l੪੬
 نانک نامِ ۄڈائیِ ہوءِ ੪੬ 
وڈائی ۔ عظمت ۔
اے نانک الہٰی نام یعنی سچائی میں تو قروعزت مسمہ ہے ۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੩ ॥
aasaa mehlaa 3.
Raag Aasaa, Third Guru:
 آسا مہلا   
 ਮਨਮੁਖਿ ਝੂਠੋ ਝੂਠੁ ਕਮਾਵੈ ॥
manmukh jhootho jhooth kamaavai.
The self-conceited soul-bride earns nothing but falsehood.
 
ਮਨਮੁਖਿ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਸਦਾ ਉਹੀ ਕੁਝ ਕਰਦੀ ਹੈ ਜੋ ਉਸ ਦੇ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੇ ਕਿਸੇ ਕੰਮ ਨਹੀਂ  ਸਕਦਾ l
 منمُکھِ جھوُٹھو جھوُٹھُ کماۄےَ  
منمکھ۔ مرید من۔ جھوٹھو جھوٹھ کماوے ۔ جھوتا کاروبار کرتا ہے ۔
من کا مرید انسان جھوٹے کام اور کاروبار کرتا ہے ۔

 ਖਸਮੈ ਕਾ ਮਹਲੁ ਕਦੇ ਨ ਪਾਵੈ ॥
khasmai kaa mahal kaday na paavai.
She can never realize God’s presence in her heart.
 
ਉਹ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਟਿਕਾਣਾ ਕਦੇ ਭੀ ਨਹੀਂ ਲੱਭ ਸਕਦੀ
 کھسمےَ کا مہلُ کدے ن پاۄےَ  
خسم ۔ مالک خدا ۔ محل ٹھکانہ ۔ کدے نہ پاوے ۔ نہیں پاتا۔
وہ کبھی بھی اپنے دل میں خدا کی موجودگی کا احساس نہیں کرسکتا ہے

 ਦੂਜੈ ਲਗੀ ਭਰਮਿ ਭੁਲਾਵੈ ॥
doojai lagee bharam bhulaavai.
Attached to the love of worldly things, rather than God, she wanders in doubt.
ਦੂਜੇ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਫਸੀ ਹੋਈ ਮਾਇਆ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਵਿਚ ਪੈ ਕੇ ਉਹ ਕੁਰਾਹੇ ਪਈ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ
 دوُجےَ لگیِ بھرمِ بھُلاۄےَ  
اسے خدا کا ٹھکانے کا پتہ نہیں چلتا اور وہم وگمان میں بھٹکتا رہتا ہے ۔

 ਮਮਤਾ ਬਾਧਾ ਆਵੈ ਜਾਵੈ ॥੧॥
mamtaa baaDhaa aavai jaavai. ||1||
Entangled in worldly attachments, the entire world keeps going through the cycles of birth and death. ||1||
ਅਪਣੱਤ ਦੇ ਬੰਧਨਾਂ ਵਿਚ ਬੱਝਾ ਹੋਇਆ ਜਗਤ ਜਨਮ ਮਰਨ ਦੇ ਗੇੜ ਵਿਚ ਪਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ 
 ممتا بادھا آۄےَ جاۄےَ  
ممتا بادھا۔ دنیاوی دولت میں گرفتار
دنیاوی دؤلت کی محبت میں گرفتار تناسخ میں پڑا رہتا ہے (1)

 ਦੋਹਾਗਣੀ ਕਾ ਮਨ ਦੇਖੁ ਸੀਗਾਰੁ ॥
duhaaganee kaa man daykh seegaar.
O’ my mind, look at the life of a self conceited person who is like a decorated deserted wife,
 ਹੇ ਮਨਖਸਮ ਦੀ ਛੱਡੀ ਹੋਈ ਮੰਦਕਰਮਣ ਇਸਤ੍ਰੀ ਦਾ ਸਿੰਗਾਰ ਵੇਖ 
 دوہاگنھیِ کا من دیکھُ سیِگارُ  
دوہاگنی ۔ دوخاوندوں والی۔ طلائی ۔ چھمٹٹر۔
وہ طلاق یافتہ عورت کی طرح خود کو دھوکہ دے رہا ہے

 ਪੁਤ੍ਰ ਕਲਤਿ ਧਨਿ ਮਾਇਆ ਚਿਤੁ ਲਾਏ ਝੂਠੁ ਮੋਹੁ ਪਾਖੰਡ ਵਿਕਾਰੁ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
putar kalat Dhan maa-i-aa chit laa-ay jhooth moh pakhand vikaar. ||1|| rahaa-o.
He always thinks about falsehood, worldly attachment, deceit and evil pursuits like the deserted wife who always thinks about her sons, their spouses, and worldly wealth,. ||1||Pause||
 
ਇਸੇ ਤਰ੍ਹਾਂ ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਪੁੱਤਰਾਂਇਸਤ੍ਰੀਧਨ ਅਤੇ ਮਾਇਆ ਵਿਚ ਚਿੱਤ ਜੋੜਦਾ ਹੈ ਉਸ ਦਾ ਇਹ ਸਾਰਾ ਮੋਹ ਵਿਅਰਥ ਹੈ  ਰਹਾਉ  
 پُت٘ر کلتِ دھنِ مائِیا چِتُ لاۓ جھوُٹھُ موہُ پاکھنّڈ ۄِکارُ  رہاءُ  
پاکھنڈ۔ دکھاوا۔ (1)رہاؤ۔ 
اے دل طلاق شدہ عورت کی جسمانی سجاوٹ کو دیکھ اولاد۔ عورت سرمایہ دولت سے محبت کرتا ہے ۔ یہ سارا بے فائدہ بیکار ہے ۔ دکھاوا ہے ۔ (1) رہاؤ۔

 ਸਦਾ ਸੋਹਾਗਣਿ ਜੋ ਪ੍ਰਭ ਭਾਵੈ ॥
sadaa sohagan jo parabh bhaavai.
One who is pleasing to God is forever a fortunate soul-bride.
 
ਜੇਹੜੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਪਿਆਰੀ ਲੱਗਦੀ ਹੈ ਉਹ ਸਦਾ ਚੰਗੇ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲੀ ਹੈ
 سدا سوہاگنھِ جو پ٘ربھ بھاۄےَ  
سوہاگن۔ خادند کی پیاری ۔ پربھ بھاوے ۔ خدا کو پیاری ۔
خدا کا پیارا ہمیشہ خوشدل رہتا ہے ۔ وہ سبق وکلام مرشد سے اپنا آپ سجاتا ہے مراد اس پر عمل کرتا ہے ۔

 ਗੁਰ ਸਬਦੀ ਸੀਗਾਰੁ ਬਣਾਵੈ ॥
gur sabdee seegaar banaavai.
She spiritually adorns herself with the Guru’s teachings.
 
ਉਹ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਰਾਹੀਂ (ਪ੍ਰਭੂਮਿਲਾਪ ਨੂੰ ਆਪਣਾ ਆਤਮਕਸੋਹਜ ਬਣਾਂਦੀ ਹੈ,
 گُر سبدیِ سیِگارُ بنھاۄےَ  
اورگرو کے سبق سے ضمیر پاک بنا لیتا ہے ۔

 ਸੇਜ ਸੁਖਾਲੀ ਅਨਦਿਨੁ ਹਰਿ ਰਾਵੈ ॥
sayj sukhaalee an-din har raavai.
Her heart is at peace and she always enjoys the company of Husband-God.
 
ਉਸ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਦੀ ਸੇਜ ਸੁਖਦਾਈ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਕਿਉਂਕਿ ਉਹ ਹਰ ਵੇਲੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦਾ ਮਿਲਾਪ ਮਾਣਦੀ ਹੈ,
 سیج سُکھالیِ اندِنُ ہرِ راۄےَ  
سیج سکھاتی ۔ اچھی خوابگاہ ۔ خوشدل۔ اندن۔ ہر روز۔ پربھ بھاوے۔ خدا کا چاہیتا۔ پیارا۔
اور ہر روز ملاپ خدا پاتا ہے

 ਮਿਲਿ ਪ੍ਰੀਤਮ ਸਦਾ ਸੁਖੁ ਪਾਵੈ ॥੨॥
mil pareetam sadaa sukh paavai. ||2||
United with her Beloved-God, she always enjoys peace and bliss. ||2||
 
ਪ੍ਰਭੂ ਪ੍ਰੀਤਮ ਨੂੰ ਮਿਲ ਕੇ ਉਹ ਸਦਾ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦੀ ਹੈ l
 مِلِ پ٘ریِتم سدا سُکھُ پاۄےَ  
مل پریتم۔ پیارے کے ملاپ سے (2)
اور الہٰی ملاپ سے روحانی سکون پاتا ہے ۔

 ਸਾ ਸੋਹਾਗਣਿ ਸਾਚੀ ਜਿਸੁ ਸਾਚਿ ਪਿਆਰੁ ॥
saa sohagan saachee jis saach pi-aar.
Truly fortunate is that soul-bride who is in love with God.
 
ਚੰਗੇ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲੀ ਹੈ ਉਹ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਜੋ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨਾਲ ਪਿਆਰ ਕਰਦੀ ਹੈ 
 سا سوہاگنھِ ساچیِ جِسُ ساچِ پِیارُ  
ساچی۔ سچی۔ ساچ سچ۔
وہی انسان جسے الہٰی پیار ہو جاتا ہےسچ اورحقیقت سے محبت ہو جاتی ہے

 ਅਪਣਾ ਪਿਰੁ ਰਾਖੈ ਸਦਾ ਉਰ ਧਾਰਿ ॥
apnaa pir raakhai sadaa ur Dhaar.
She always keeps her Husband-God enshrined in her heart.
 
ਉਹ ਆਪਣੇ ਪਤੀਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਹਮੇਸ਼ਾ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਟਿਕਾਈ ਰੱਖਦੀ ਹੈ,
 آپنھا پِرُ راکھےَ سدا اُر دھارِ  
پر۔ پتی ۔ خاوند۔ مالک رکھے۔ بچاتا ہے ۔ اردھار۔ دل میں بسا کر۔
اور خدا کو دل میں بساتا ہے

 ਨੇੜੈ ਵੇਖੈ ਸਦਾ ਹਦੂਰਿ ॥
nayrhai vaykhai sadaa hadoor.
She always deems Him near and in front of her.
 
ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਦਾ ਆਪਣੇ ਨੇੜੇ ਆਪਣੇ ਅੰਗਸੰਗ ਵੇਖਦੀ ਹੈ,
 نیڑےَ ۄیکھےَ سدا ہدوُرِ  
حدود ۔ حاضر
اور اسے حاضر ناضر سمجھتا ہے

 ਮੇਰਾ ਪ੍ਰਭੁ ਸਰਬ ਰਹਿਆ ਭਰਪੂਰਿ ॥੩॥
mayraa parabh sarab rahi-aa bharpoor. ||3||
She firmly believes and says that My God is all-pervading everywhere. ||3||
 ਮੇਰਾ ਪਿਆਰਾ ਪ੍ਰਭੂ ਸਭਨਾਂ ਵਿਚ ਵਿਆਪਕ ਹੈ 
 میرا پ٘ربھُ سرب رہِیا بھرپوُرِ  
بھر پور۔ مکمل۔ (3)
اسے ہر دل ہر بشر میں الہٰی نور بستا دکھائی دیتاہے ۔ (3)

 ਆਗੈ ਜਾਤਿ ਰੂਪੁ ਨ ਜਾਇ ॥
aagai jaat roop na jaa-ay.
Neither social status nor beauty goes to the world hereafter.
 
ਪਰਲੋਕ ਵਿਚ ਨਾਹ ਇਹ ਉੱਚੀ ਜਾਤਿ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਨਾਹ ਇਹ ਸੋਹਣਾ ਰੂਪ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 آگےَ جاتِ روُپُ ن جاءِ  
جات۔ روپ۔ ہستی حیثیت اور شکل وصورت۔
الہٰی دربار میں انسان کی حیثیت اور شکل وصورت کی کوئی قدروقیمت نہیں

 ਤੇਹਾ ਹੋਵੈ ਜੇਹੇ ਕਰਮ ਕਮਾਇ ॥
tayhaa hovai jayhay karam kamaa-ay.
Whatever deeds one does in this world, one becomes like that and is judged in God’s court accordingly.
 
(ਇਸ ਲੋਕ ਵਿਚ ਮਨੁੱਖਜਿਹੋ ਜਿਹੇ ਕਰਮ ਕਰਦਾ ਹੈ ਉਹੋ ਜਿਹਾ ਉਸ ਦਾ ਜੀਵਨ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 تیہا ہوۄےَ جیہے کرم کماءِ  
تیہا۔ ویسا ۔ کرم۔ اعمال ۔ کمائے کئے ہیں۔
وہاں اعمال دیکھے جاتے ہیں۔ اعمالل کی پڑتال ہوتی ہے ۔

 ਸਬਦੇ ਊਚੋ ਊਚਾ ਹੋਇ ॥
sabday oocho oochaa ho-ay.
By following the Guru’s word, one spiritually becomes the highest of the high.
 
ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਮਨੁੱਖ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਵਿਚ ਉੱਚਿਆਂ ਤੋਂ ਉੱਚਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 سبدے اوُچو اوُچا ہوءِ  
سبدے ۔ سبد سے ۔ کلام کے ذریعے ۔ سبق سے ۔ اوچو اوچا۔ بلند عظمت
سبق مرشد و کلام مرشد کی برکت سے اسے بلند عظمت و روحانیت کی بلندی ہوتی ہے ۔

 ਨਾਨਕ ਸਾਚਿ ਸਮਾਵੈ ਸੋਇ ॥੪॥੮॥੪੭॥
naanak saach samaavai so-ay. ||4||8||47||
O Nanak, he merges in the eternal God. ||4||8||47||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਉਹ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਵਿਚ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ੪੭ 
 نانک ساچِ سماۄےَ سوءِ ੪੭ 
( ساحے ) ساچ سماوے ۔ حقیقت میں مجزوب سوئے ۔و ہی ۔
اے نانک وہ حقیقت اور سچ وخدا میں مجذوب رہتا ہے ۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੩ ॥
aasaa mehlaa 3.
Raag Aasaa, Third Guru:
 آسا مہلا   
 ਭਗਤਿ ਰਤਾ ਜਨੁ ਸਹਜਿ ਸੁਭਾਇ ॥
bhagat rataa jan sahj subhaa-ay.
The one who becomes imbued with the loving devotion of God remains in a state of peace and poise.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਭਗਤੀ ਵਿਚ ਰੰਗਿਆ ਜਾਂਦਾ ਹੈਉਹ ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ ਵਿਚ ਟਿਕਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ l
 بھگتِ رتا جنُ سہجِ سُبھاءِ  
سہج سبھائے ۔ اپنے آپ۔قدرقی ۔
قدرتی طور پر وہ مرشد کے سچے خوف سے سچ اور حقیقت کو اپنا لیتا ہے ۔

 ਗੁਰ ਕੈ ਭੈ ਸਾਚੈ ਸਾਚਿ ਸਮਾਇ ॥
gur kai bhai saachai saach samaa-ay.
With the respect of the Guru and the revered fear of God, he merges in the eternal God.
 ਗੁਰੂ ਦੇ ਅਦਬ ਵਿਚ ਰਹਿ ਕੇ ਸਦਾਥਿਰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਡਰ ਵਿਚ ਰਹਿ ਕੇ ਉਹ ਸਦਾਥਿਰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਵਿਚ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 گُر کےَ بھےَ ساچےَ ساچِ سماءِ  
گرکے بھے ساچے۔ مرشد کے سچے خوف سے ۔ ساچ سمائے ۔ سچ حقیقت ۔ اور خدا میں محو و مجذوب ہوتا ہے ۔
غرض یہ کہ حقیقت میں مجذوب و محو ہو جاتا ہے ۔

 ਬਿਨੁ ਗੁਰ ਪੂਰੇ ਭਗਤਿ ਨ ਹੋਇ ॥
bin gur pooray bhagat na ho-ay.
God’s worship is not possible, without the guidance of the perfect Guru.
 
(ਪਰਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਣ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਭਗਤੀ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦੀ
 بِنُ گُر پوُرے بھگتِ ن ہوءِ  
بن گر پورے ۔ بغیر کامل مرشدکے ۔ بھگت۔ عابد۔ عاشق الہٰی ۔
کامل مرشد کے بغیر عبادت الہٰی نہیں ہو سکتی۔

 ਮਨਮੁਖ ਰੁੰਨੇ ਅਪਨੀ ਪਤਿ ਖੋਇ ॥੧॥
manmukh runnay apnee pat kho-ay. ||1||
The self-willed people ultimately cry after losing their honor. ||1||
 
ਆਪ ਹੁੰਦਰੇ ਪ੍ਰਾਣੀ ਆਪਣੀ ਇੱਜ਼ਤ ਗੁਆ ਕੇ ਵਿਰਲਾਪ ਕਰਦੇ ਹਨ
 منمُکھ رُنّنے اپنیِ پتِ کھوءِ  
رنے۔ مشغول۔ پت۔ عزت۔(1)
مرید من عزت گنوا کر پچھتاتے ہیں۔ (1)

 ਮੇਰੇ ਮਨ ਹਰਿ ਜਪਿ ਸਦਾ ਧਿਆਇ ॥
mayray man har jap sadaa Dhi-aa-ay.
O’ my mind, always remember and meditate on God’s name with loving devotion.
ਹੇ ਮੇਰੇ ਮਨਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਗੁਣ ਚੇਤੇ ਕਰਸਦਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਧਿਆਨ ਧਰ
 میرے من ہرِ جپِ سدا دھِیاءِ  
دھیائے ۔ متوجو ہوکر۔ توجہ دے کر ۔
اے میرے من ہمیشہ خدا کے نام کو پیار سے عقیدت کے ساتھ یاد رکھیں اور اس پر غور کریں

 ਸਦਾ ਅਨੰਦੁ ਹੋਵੈ ਦਿਨੁ ਰਾਤੀ ਜੋ ਇਛੈ ਸੋਈ ਫਲੁ ਪਾਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
sadaa anand hovai din raatee jo ichhai so-ee fal paa-ay. ||1|| rahaa-o.
One who meditates on Naam, a state of bliss always prevails within him and he obtains whatever he wishes. ||1||Pause||
 
(ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਜਪਦਾ ਹੈ ਉਸ ਦੇ ਅੰਦਰ ਦਿਨ ਰਾਤ ਸਦਾ ਆਤਮਕ ਚਾਉ ਬਣਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈਉਹ ਜਿਸ ਫਲ ਦੀ ਇੱਛਾ ਕਰਦਾ ਹੈਉਹੀ ਫਲ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲੈਂਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 سدا اننّدُ ہوۄےَ دِنُ راتیِ جو اِچھےَ سوئیِ پھلُ پاءِ  رہاءُ  
من اچھے ۔ دلی خواہشات کے مطابق۔ پھل۔ نتیجہ ۔کامیابی ۔(1) رہاؤ۔
جو شخص نام پر غور کرتا ہے ، اس کے اندر ہمیشہ خوشی کی کیفیت قائم رہتی ہے اور جو چاہے حاصل کرتا ہے۔

 ਗੁਰ ਪੂਰੇ ਤੇ ਪੂਰਾ ਪਾਏ ॥ 
gur pooray tay pooraa paa-ay. 
By following the teachings of the perfect Guru, one realizes the perfect God,
 
ਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਪਾਸੋਂ ਹੀ ਸਾਰੇ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਮਾਲਕ ਪਰਮਾਤਮਾ ਲੱਭਦਾ ਹੈ,
 گُر پوُرے تے پوُرا پاۓ  
گرپورے۔ کامل مرشد۔ پورا۔ مکمل۔
کامل مرشد کامل خدا سے ملاپ کراتا ہے ۔

 ਹਿਰਦੈ ਸਬਦੁ ਸਚੁ ਨਾਮੁ ਵਸਾਏ ॥
hirdai sabad sach naam vasaa-ay.
and the Guru’s word and the eternal God’s Name is enshrined in the heart.
 
ਅਤੇ ਗੁਰੂ ਦਾ ਸ਼ਬਦ ਅਤੇ ਸੁਆਮੀ ਦਾ ਸੱਚਾ ਨਾਮ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਟਿਕ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 ہِردےَ سبدُ سچُ نامُ ۄساءِ  
ہردے۔ دل میں۔ سبد ۔کلام۔ سچ نام۔ روحانی سچ۔
دل میں سچا نام اور کلام بستا ہے

 ਅੰਤਰੁ ਨਿਰਮਲੁ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਸਰਿ ਨਾਏ ॥
antar nirmal amrit sar naa-ay.
One who meditates on God’s nectar like ambrosial Naam, his heart becomes immaculate from within.
 
ਜੋ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਦੇ ਸਰੋਵਰ ਅੰਦਰ ਇਸ਼ਨਾਨ ਕਰਦਾ ਹੈਉਸ ਦਾ ਹਿਰਦਾ ਪਵਿੱਤਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 انّترُ نِرملُ انّم٘رِت سرِ ناۓ  
انتر نرمل۔ پاک دلی انمرت۔ آب حیات کا سمندر۔
دل پاک اور آب حیات کے سمندر کا غسل کرتا ہے ۔

 ਸਦਾ ਸੂਚੇ ਸਾਚਿ ਸਮਾਏ ॥੨॥
sadaa soochay saach samaa-ay. ||2||
Thus, by always remaining pure, one merges in the eternal God. ||2||
 
ਸਦਾ ਲਈ ਪਵਿਤ੍ਰ ਹੋਣ ਕਰ ਕੇ ਉਹ ਸੱਚੇ ਸੁਆਮੀ ਅੰਦਰ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 سدا سوُچے ساچِ سماۓ  
سوچے۔ پاک ۔ ساچ سمائے ۔ سچائی اپنا کر۔ سچ دل میں بسا کر۔ (2)
صدیوی طور پر پاک اور حقیقت میں محو و مجذوب ہو جاتا ہے ۔ (2)

 ਹਰਿ ਪ੍ਰਭੁ ਵੇਖੈ ਸਦਾ ਹਜੂਰਿ ॥
har parabh vaykhai sadaa hajoor.
He always feels God’s presence with him.
ਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨੂੰ ਸਦਾ ਅੰਗਸੰਗ ਵੱਸਦਾ ਵੇਖਦਾ ਹੈ,
 ہرِ پ٘ربھُ ۄیکھےَ سدا ہجوُرِ  
سدا حدورسا ہمنے ۔ حاضر ناظر ۔
وہی انسان حقیقت اور خدا کو ہمیشہ سامنے اور حاضر ناطر سمجھتا ہے

 ਗੁਰ ਪਰਸਾਦਿ ਰਹਿਆ ਭਰਪੂਰਿ ॥
gur parsaad rahi-aa bharpoor.
By Guru’s Grace, he beholds God pervading everywhere.
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਉਸ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਹਰ ਥਾਂ ਵਿਆਪਕ ਦਿੱਸਦਾ ਹੈ
 گُر پرسادِ رہِیا بھرپوُرِ  
بھر پور ۔ مکمل طور پر
اور رحمت مرشد سے ہرجائی جانتا اور سمجھتا ہے

 ਜਹਾ ਜਾਉ ਤਹ ਵੇਖਾ ਸੋਇ ॥
jahaa jaa-o tah vaykhaa so-ay.
Wherever I go, there I see Him.
 
ਮੈਂ ਜਿਧਰ ਜਾਂਦਾ ਹਾਂ ਉਸ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨੂੰ ਹੀ ਵੇਖਦਾ ਹਾਂ
 جہا جاءُ تہ ۄیکھا سوءِ  
سوئے ۔ اسے ۔ اور دیگر ۔دوسرا(3)
میں جدھر دیکھتا ہوں وہی نظر آتا ہے

 ਗੁਰ ਬਿਨੁ ਦਾਤਾ ਅਵਰੁ ਨ ਕੋਇ ॥੩॥
gur bin daataa avar na ko-ay. ||3||
Except the Guru, there is no other bestower of the gift of Naam. ||3||
 
ਗੁਰੂ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਕੋਈ ਹੋਰ ਇਹ (ਉੱਚੀਦਾਤਿ ਦੇਣ ਜੋਗਾ ਨਹੀਂ ਹੈ 
 گُر بِنُ داتا اۄرُ ن کوءِ  
۔مرشد کے بغیر ایسی نعمت بخشتے و عنایت کرنے والاکوئی نہیں۔ (3)

 ਗੁਰੁ ਸਾਗਰੁ ਪੂਰਾ ਭੰਡਾਰ ॥
gur saagar pooraa bhandaar.
The Guru is like an ocean and the perfect treasure of virtues,
 
ਗੁਰੂ ਸਮੁੰਦਰ ਹੈ ਅਤੇ ਉਸ ਦਾ ਖ਼ਜ਼ਾਨਾ ਅਖੁੱਟ ਹੈ,
 گُرُ ساگرُ پوُرا بھنّڈار  
ساگر۔ سمندر ۔ پورا بھنڈار۔ کامل خزانہ۔ کامل خزانہ۔
اے نانک مرشد ایک ایسےسمندر کی مانند ہے

 ਊਤਮ ਰਤਨ ਜਵਾਹਰ ਅਪਾਰ ॥
ootam ratan javaahar apaar.
in it are limitless sublime jewels and diamonds of God’s praises,
 
ਜਿਸ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਤੇ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੇ ਬੇਅੰਤ ਕੀਮਤੀ ਰਤਨ ਜਵਾਹਰ ਭਰੇ ਪਏ ਹਨ
 اوُتم رتن جۄاہر اپار  
اُتم۔ بلند رتبہ۔ رتن ہیرا۔
جن میں بیشمار صفت صلاح کے ہیرے جواہرات جیسی قیمتی اشیاء بھری ہوئی ہیں۔

 ਗੁਰ ਪਰਸਾਦੀ ਦੇਵਣਹਾਰੁ ॥
gur parsaadee dayvanhaar.
By the Guru’s grace, God blesses us with such priceless gifts of His praises
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂਦਾਤਾਰ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੇ ਕੀਮਤੀ ਰਤਨ ਜਵਾਹਰ ਦੇਂਦਾ ਹੈ
 گُر پرسادیِ دیۄنھہارُ  
دیوانہار۔ دینے والا۔ دیونہار دینے کی طاقت رکھنے والا۔
جو رحمت مرشد سے ملتے ہیں اور اس میں دینے کی طاقت ہے۔

 ਨਾਨਕ ਬਖਸੇ ਬਖਸਣਹਾਰੁ ॥੪॥੯॥੪੮॥
naanak bakhsay bakhsanhaar. ||4||9||48||
O’ Nanak, God Himself blesses people with the precious gift of Naam. |4||9||48||
ਹੇ ਨਾਨਕਜੀਵਾਂ ਦੀ ਬਖ਼ਸ਼ਸ਼ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਬਖ਼ਸ਼ਸ਼ ਕਰਦਾ ਹੈ ਤੇ ਇਹ ਕੀਮਤੀ ਖ਼ਜ਼ਾਨੇ ਦੇਂਦਾ ਹੈ ੪੮
 نانک بکھسے بکھسنھہارُ ੪੮ 
بخشنہار۔ معاف کرنے کی طاقت رکھنے والا۔
اے نانک کرم عنایت کی حیثیت رکھنے والا بخشتا ہے ۔ 

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੩ ॥
aasaa mehlaa 3.
Raag Aasaa, Third Guru:
 آسا مہلا   
 ਗੁਰੁ ਸਾਇਰੁ ਸਤਿਗੁਰੁ ਸਚੁ ਸੋਇ ॥
gur saa-ir satgur sach so-ay.
The Guru is the ocean of virtues; the true Guru is the embodiment of God.
 
ਗੁਰੂ (ਗੁਣਾਂ ਦਾਸਮੁੰਦਰ ਹੈਗੁਰੂ ਉਸ ਸਦਾਥਿਰ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਰੂਪ ਹੈ,
 گُرُ سائِرُ ستِگُرُ سچُ سوءِ  
گر، طریقہ ، سائیر، تالاب۔ سمندر۔ ستگرسچا مرشد سچ۔ خدا سوئے ۔ گرپرسادی۔ رحمت مرشد سے ۔
مرشد ایک اوصاف کا سمندر ہے اور سچا اُستاد ہے

 ਪੂਰੈ ਭਾਗਿ ਗੁਰ ਸੇਵਾ ਹੋਇ ॥
poorai bhaag gur sayvaa ho-ay.
Through perfect destiny, one is able to serves the Guru by following His teachings.
 
ਵੱਡੀ ਕਿਸਮਤਿ ਨਾਲ ਹੀ ਗੁਰੂ ਦੀ (ਦੱਸੀਸੇਵਾ ਹੋ ਸਕਦੀ ਹੈ
 پوُرےَ بھاگِ گُر سیۄا ہوءِ  
سیوا خدامت
اور حقیقی انسان بلند قسمت سے اس کی خدمت ہوتی ہے ۔