Urdu-Page-361

ਗੁਰ ਕਾ ਦਰਸਨੁ ਅਗਮ ਅਪਾਰਾ ॥੧॥
gur kaa darsan agam apaaraa. ||1||
but the Guru’s teaching is limitless and beyond comprehension. ||1||
 
ਪਰ ਗੁਰੂ ਦਾ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਪਹੁੰਚ ਤੋਂ ਪਰੇ ਹੈ l ਇਹ ਛੇ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਦਾ ਅੰਤ ਨਹੀਂ ਪਾ ਸਕਦੇ 
 گُر کا درسنُ اگم اپارا  
اگم۔ انسان رسائی سے اوپر اپار۔ لامحدود ۔
دیدار مرشد انسانی رسائی سے بلند اور لا محدود ہے۔

 ਗੁਰ ਕੈ ਦਰਸਨਿ ਮੁਕਤਿ ਗਤਿ ਹੋਇ ॥
gur kai darsan mukat gat ho-ay.
By following the Guru’s teachings, one attains liberation from the vices,
 
ਗੁਰੂ ਦੇ (ਦਿੱਤੇ ਹੋਏਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂ ਖ਼ਲਾਸੀ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ,
 گُر کےَ درسنِ مُکتِ گتِ ہوءِ  
گر ۔ مرشد ۔ درسن۔ دیدار ۔ مکت نجات۔ گت۔ حالت ۔
دیدار مرشدذریعہ نجات ہے

 ਸਾਚਾ ਆਪਿ ਵਸੈ ਮਨਿ ਸੋਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
saachaa aap vasai man so-ay. ||1|| rahaa-o.
and the presence of eternal God is realized in the heart. ||1||Pause||
 
ਉਹ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਆਪ ਮਨ ਵਿਚ  ਵੱਸਦਾ ਹੈ l ਰਹਾਉ 
 ساچا آپِ ۄسےَ منِ سوءِ  رہاءُ  
ساچا۔ سچا خدا۔ وسے من سوئے اس کے دل میں بستا ہے رہاؤ۔
سچا خدااس کے دل میں بستا ہے۔ رہاو

 ਗੁਰ ਦਰਸਨਿ ਉਧਰੈ ਸੰਸਾਰਾ ॥
gur darsan uDhrai sansaaraa.
The entire world is saved from the vices by following the Guru’s teachings,
 
ਜਗਤ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ (ਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂਬਚ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
 گُر درسنِ اُدھرےَ سنّسارا  
اُدھرے ۔ بچتا ہے ۔ سنسارا۔ عالم۔بھاؤپیار۔
گرو کی تعلیمات پر عمل کرکے پوری دنیا کو برائیوں سے نجات ملی ،

 ਜੇ ਕੋ ਲਾਏ ਭਾਉ ਪਿਆਰਾ ॥
jay ko laa-ay bhaa-o pi-aaraa.
only if one imbues one self with the love of Guru’s teachings.
 
(ਪਰ ਤਾਂਜੇ ਕੋਈ ਮਨੁੱਖ (ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਵਿਚਪ੍ਰੇਮਪਿਆਰ ਜੋੜੇ
 جے کو لاۓ بھاءُ پِیارا 
صرف اس صورت میں جب کوئی شخص اپنے آپ کو گرو کی تعلیمات سے پیار کرے

 ਭਾਉ ਪਿਆਰਾ ਲਾਏ ਵਿਰਲਾ ਕੋਇ ॥
bhaa-o pi-aaraa laa-ay virlaa ko-ay.
But only a rare person embraces true love for Guru’s teachings.
 
ਪਰ ਕੋਈ ਵਿਰਲਾ ਮਨੁੱਖ ਹੀ (ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਵਿਚਪ੍ਰੇਮਪਿਆਰ ਪੈਦਾ ਕਰਦਾ ਹੈ
 بھاءُ پِیارا لاۓ ۄِرلا کوءِ  
ورلا۔ کوئی ہی ۔ (2)
لیکن صرف ایک نایاب فرد گرو کی تعلیمات سے حقیقی محبت قبول کرتا ہے

 ਗੁਰ ਕੈ ਦਰਸਨਿ ਸਦਾ ਸੁਖੁ ਹੋਇ ॥੨॥
gur kai darsan sadaa sukh ho-ay. ||2||
Everlasting peace is attained by following the Guru’s teachings. ||2||
 
ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਵਿਚ (ਚਿੱਤ ਜੋੜਿਆਂਸਦਾ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਮਿਲਦਾ ਹੈ 
 گُر کےَ درسنِ سدا سُکھُ ہوءِ  
 لازوال امن گورو کی تعلیمات پر عمل کرنے سے حاصل ہوتا ہے

 ਗੁਰ ਕੈ ਦਰਸਨਿ ਮੋਖ ਦੁਆਰੁ ॥
gur kai darsan mokh du-aar.
By following the Guru’s teachings one finds the way to liberation from vices.
 
ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਵਿਚ (ਸੁਰਤਿ ਟਿਕਾਇਆਂਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂ ਖ਼ਲਾਸੀ ਪਾਣ ਵਾਲਾ ਰਾਹ ਲੱਭ ਪੈਂਦਾ ਹੈ
 گُر کےَ درسنِ موکھ دُیارُ  
موکھ دوآر۔ ورنجات۔
 برائیاں ختم ہو جاتی ہیں

 ਸਤਿਗੁਰੁ ਸੇਵੈ ਪਰਵਾਰ ਸਾਧਾਰੁ ॥
satgur sayvai parvaar saaDhaar.
By following the Guru’s teachings, one becomes a source of spiritual support to one’s entire family.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਆਪਣੇ ਪਰਵਾਰ ਵਾਸਤੇ ਭੀ ਸਹਾਰਾ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 ستِگُرُ سیۄےَ پرۄار سادھارُ  
سنگر سیوے ۔ سچے مرشد کی خدمت سے ۔ پروار۔ سدھار۔ خاندان کا سدھار ہوجاتا ہے
اور سچے مرشد کی خدمت سے خاندان اور قبیلے کو نجات ملتی ہے اور 

 ਨਿਗੁਰੇ ਕਉ ਗਤਿ ਕਾਈ ਨਾਹੀ ॥
niguray ka-o gat kaa-ee naahee.
There is no salvation for the one who does not follow the Guru’s teachings.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਨਹੀਂ ਪੈਂਦਾਉਸ ਨੂੰ ਕੋਈ ਉੱਚੀ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਪ੍ਰਾਪਤ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦੀ
 نِگُرے کءُ گتِ کائیِ ناہیِ  
گت۔ بلند روحانی حالت۔نگرے ۔ بے مرشد۔
بے مرشد انسان کو بلند روحانی زندگی حاصل نہیں ہوتی

 ਅਵਗਣਿ ਮੁਠੇ ਚੋਟਾ ਖਾਹੀ ॥੩॥
avgan muthay chotaa khaahee. ||3||
Being deceived by evil habits, they suffer punishment. ||3||
 
ਜਿਹੜੇ ਮਨੁੱਖ ਪਾਪਾ ਵਿਚ ਫਸ ਕੇ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਵਲੋਂ ਲੁੱਟੇ ਜਾ ਰਹੇ ਹਨਉਹ ਵਿਕਾਰਾਂ ਦੀਆਂ ਸੱਟਾਂ ਖਾਂਦੇ ਹਨ l
 اۄگنھِ مُٹھے چوٹا کھاہیِ  
اوگن۔ گناہوں میں۔مٹھے ۔ لٹ گئے ۔ (3)
۔ جو انسان گناہوں اور بدکاریوں کی گرفت میں آجاتے ہیں۔

 ਗੁਰ ਕੈ ਸਬਦਿ ਸੁਖੁ ਸਾਂਤਿ ਸਰੀਰ ॥
gur kai sabad sukh saaNt sareer.
Peace and tranquility prevail in the mind and body by following the Guru’s word,
 
ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਵਿਚ ਜੁੜਿਆਂ (ਮਨੁੱਖ ਦੇਸਰੀਰ ਨੂੰ ਸੁਖ ਮਿਲਦਾ ਹੈ ਸ਼ਾਂਤੀ ਮਿਲਦੀ ਹੈ,
 گُر کےَ سبدِ سُکھُ ساںتِ سریِر  
گر کے سبد۔ کلام مرشد۔ سانت سیر۔ جسمانی سکون۔
حقیقت واصلیت میں اعتماد و یقین ہو جاتا ہے ۔ کلام مرشد پر عمل کرنے سے جسمانی عیشق وآرام ملتا ہے

 ਗੁਰਮੁਖਿ ਤਾ ਕਉ ਲਗੈ ਨ ਪੀਰ ॥
gurmukh taa ka-o lagai na peer.
The person who follows the Guru’s teachings is not afflicted by any pain.
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਣ ਕਰਕੇ ਉਸ ਨੂੰ ਕੋਈ ਦੁੱਖ ਪੋਹ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ
 گُرمُکھِ تا کءُ لگےَ ن پیِر  
پیر۔ درد۔ عذاب۔
مرید مرشد کوئی عذاب نہیں پاتا

 ਜਮਕਾਲੁ ਤਿਸੁ ਨੇੜਿ  ਆਵੈ 
jamkaal tis nayrh na aavai.
The messenger (fear) of death does not come near him.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਂਦਾ ਹੈ ਆਤਮਕ ਮੌਤ ਉਸ ਦੇ ਨੇੜੇ ਨਹੀਂ ਢੁੱਕ ਸਕਦੀ
 جمکالُ تِسُ نیڑِ ن آۄےَ  
جمکال۔ روحانی موت ۔
روحانی موت نزدیک نہیں پھٹکتی

 ਨਾਨਕ ਗੁਰਮੁਖਿ ਸਾਚਿ ਸਮਾਵੈ ॥੪॥੧॥੪੦॥
naanak gurmukh saach samaavai. ||4||1||40||
O’ Nanak, the Guru’s follower merges in the eternal God.||4||1||40||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਉਹ ਮਨੁੱਖ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਵਿਚ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ੪੦
 نانک گُرمُکھِ ساچِ سماۄےَ ੪੦ 
گورمکھ۔ مرید مرشد۔ سچ سماوے ۔ حقیقت میں جزب ہوجاتے 
اے نانک ایسا انسان سچ اورحقیقت میں مجذوب رہتا ہے ۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੩ ॥
aasaa mehlaa 3.
Raag Aasaa, Third Guru:
 آسا مہلا   
 ਸਬਦਿ ਮੁਆ ਵਿਚਹੁ ਆਪੁ ਗਵਾਇ ॥
 sabad mu-aa vichahu aap gavaa-ay.
 One who frees himself from the bonds of Maya by following the Guru’s word, eradicates his self-conceit from within.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਵਿਚ ਜੁੜ ਕੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਲੋਂ ਨਿਰਲੇਪ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰੋਂ ਆਪਾਭਾਵ ਦੂਰ ਕਰ ਲੈਂਦਾ ਹੈ
 سبدِ مُیا ۄِچہُ آپُ گۄاءِ  
سبد۔ کلام۔ سبق۔ آپ ۔خودی ۔ گوائے ۔ ختم کرکے
خدالامحدود۔ انسانی رسائی سے بالا و بلند بیان سے بعید ہے ( کوئی ہی سبق وکلام مرشد سے مل پاتا ہے ۔

 ਸਤਿਗੁਰੁ ਸੇਵੇ ਤਿਲੁ ਨ ਤਮਾਇ ॥
satgur sayvay til na tamaa-ay. 
Not even an iota of greed remains in the person who follows the teachings of the true Guru.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਂਦਾ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ (ਮਾਇਆ ਦਾਰਤਾ ਭਰ ਭੀ ਲਾਲਚ ਨਹੀਂ ਰਹਿੰਦਾ
 ستِگُرُ سیۄے تِلُ ن تماءِ  
سیوے ۔ خدمت کرئے ۔ تل نہ طماعے ۔ تل جتنا لال ۔
سچا مرشد بلند عظمت ہے وہ دیرینہ جدائی پائے ہوئے کو ملا دیتا ہے

 ਨਿਰਭਉ ਦਾਤਾ ਸਦਾ ਮਨਿ ਹੋਇ ॥
nirbha-o daataa sadaa man ho-ay.
In that person’s mind always dwells the fearless benevolent Giver.
 
ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਉਹ ਦਾਤਾਰ ਸਦਾ ਵੱਸਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ਜਿਸ ਨੂੰ ਕਿਸੇ ਤੋਂ ਕੋਈ ਡਰ ਨਹੀਂ
 نِربھءُ داتا سدا منِ ہوءِ  
نربھؤ۔ بیخوف۔ داتا ۔ سخی۔
اس شخص کا ذہن ہمیشہ نڈر مہربان عطا کرنے والے میں بستا ہے۔

 ਸਚੀ ਬਾਣੀ ਪਾਏ ਭਾਗਿ ਕੋਇ ॥੧॥
sachee banee paa-ay bhaag ko-ay. ||1||
But only by great good fortune does a rare person realize the eternal God by following the divine words of the Guru. ||1||
 
ਪਰ ਕੋਈ ਵਿਰਲਾ ਮਨੁੱਖ ਹੀ ਚੰਗੀ ਕਿਸਮਤਿ ਨਾਲ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੀ ਬਾਣੀ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਉਸ ਨੂੰ ਮਿਲ ਸਕਦਾ ਹੈ 
 سچیِ بانھیِ پاۓ بھاگِ کوءِ  
سچی بانی۔ سچا کلام۔ بھاگ۔ قسمت تقدیر۔(1)
 بلند وبالا روحانی کلام سے انسان بلند و بالا روحانی زندگی والا ہو جاتا ہے

 ਗੁਣ ਸੰਗ੍ਰਹੁ ਵਿਚਹੁ ਅਉਗੁਣ ਜਾਹਿ ॥
gun sangrahu vichahu a-ogun jaahi.
O’ my friends, amass virtues, so that vices from within you go away.
 
ਹੇ ਭਾਈਭਲਾਈਆਂ ਨੂੰ ਇਕੱਤਰ ਕਰ ਤਾਂ ਜੋ ਅੰਦਰੋਂ ਬੁਰਿਆਈਆਂ ਭੱਜ ਜਾਣ
 گُنھ سنّگ٘رہُ ۄِچہُ ائُگُنھ جاہِ  
سنگر یہہ۔ اؤصاف اکھٹے کرنا۔ اؤگن۔ گناہگاریاں۔
اے میرے دوستو ، فضائل جمع کرو ، تاکہ آپ کے اندر سے برائیاں دور ہوجائیں

 ਪੂਰੇ ਗੁਰ ਕੈ ਸਬਦਿ ਸਮਾਹਿ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
pooray gur kai sabad samaahi. ||1|| rahaa-o.
Through the word of the true Guru, you will merge in God. ||1||Pause||
 
ਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਰਾਹੀਂਤੂੰ ਗੁਣਾਂ ਦੇ ਮਾਲਕ ਪ੍ਰਭੂ ਵਿਚ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਹਿਂਗਾ  ਰਹਾਉ 
 پوُرے گُر کےَ سبدِ سماہِ  رہاءُ  
سبدسماہے۔ کلام یا سبق پر عمل پیرا ہوئے ۔ دل میں بسائے ۔
سچے گرو کے کلام کے ذریعہ ، آپ خدا میں ضم ہوجائیں گے

 ਗੁਣਾ ਕਾ ਗਾਹਕੁ ਹੋਵੈ ਸੋ ਗੁਣ ਜਾਣੈ ॥
gunaa kaa gaahak hovai so gun jaanai.
Only the one who is the seeker of the virtues knows their worth.
 
ਜੋ ਨੇਕੀਆਂ ਦਾ ਵਣਜਾਰਾ ਹੈਓਹੀ ਨੇਕੀਆਂ ਦੀ ਕਦਰ ਨੂੰ ਜਾਣਦਾ ਹੈ
 گُنھا کا گاہکُ ہوۄےَ سو گُنھ جانھےَ  
گاہک ۔خریدار چاہنے والا۔ پیارا۔
مرید مرشد ہی الہٰی قدروقیمت سمجھتا ہے ۔

 ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਸਬਦਿ ਨਾਮੁ ਵਖਾਣੈ ॥
amrit sabad naam vakhaanai.
He meditates on God’s Name by following the ambrosial words of the Guru,
 
ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਸਰੂਪ ਗੁਰਸ਼ਬਦ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 انّم٘رِت سبدِ نامُ ۄکھانھےَ 
 کوئی مرید مرشد ہوکر ہی کلام مرشد کی تشریح کرتا ہے ۔

 ਸਾਚੀ ਬਾਣੀ ਸੂਚਾ ਹੋਇ ॥
saachee banee soochaa ho-ay.
By following the divine word, his behaviour becomes pure (righteous).
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੀ ਬਾਣੀ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਪਵਿਤ੍ਰ ਜੀਵਨ ਵਾਲਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 ساچیِ بانھیِ سوُچا ہوءِ 
خدائی کلام پر عمل کرنے سے ، اس کا سلوک پاک (نیک) ہوجاتا ہے

 ਗੁਣ ਤੇ ਨਾਮੁ ਪਰਾਪਤਿ ਹੋਇ ॥੨॥
gun tay naam paraapat ho-ay. ||2||
By acquiring these virtues, he attains the wealth of Naam. ||2||
ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਉਸ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਸੌਦਾ ਮਿਲ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 گُنھ تے نامُ پراپتِ ہوءِ  
پراپت حاصل ۔ (2)
ان خوبیوں کو حاصل کرکے ، وہ نام کی دولت حاصل کرلیتا ہے

 ਗੁਣ ਅਮੋਲਕ ਪਾਏ ਨ ਜਾਹਿ ॥
gun amolak paa-ay na jaahi.
These invaluable virtues cannot be acquired easily.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਮੁੱਲ ਨਹੀਂ ਪੈ ਸਕਦਾਕਿਸੇ ਭੀ ਕੀਮਤਿ ਤੋਂ ਮਿਲ ਨਹੀਂ ਸਕਦੇ l
 گُنھ امولک پاۓ ن جاہِ  
امولک۔ بیش قیمت۔
یہ انمول خوبی آسانی سے حاصل نہیں کی جاسکتی۔

 ਮਨਿ ਨਿਰਮਲ ਸਾਚੈ ਸਬਦਿ ਸਮਾਹਿ ॥
man nirmal saachai sabad samaahi.
These virtues come to reside in the mind which is rendered pure by the divine words of God’s praises.
 
ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਰਾਹੀਂ (ਇਹ ਗੁਣਪਵਿਤ੍ਰ ਹੋਏ ਮਨ ਵਿਚ  ਵੱਸਦੇ ਹਨ
 منِ نِرمل ساچےَ سبدِ سماہِ  
نرمل۔ پاک۔ سماہے۔ بساتا ہے ۔ مجذوب ہوتا ہے
یہ خوبیاں ذہن میں خدا کی حمد کے الفاظ کے ذریعہ ملتی ہیں 

 ਸੇ ਵਡਭਾਗੀ ਜਿਨ੍ਹ੍ਹ ਨਾਮੁ ਧਿਆਇਆ ॥
say vadbhaagee jinH naam Dhi-aa-i-aa.
Very fortunate are those who have meditated on Naam,
 
ਉਹ ਵੱਡੇ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲੇ ਹਨ ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਬੰਦਿਆਂ ਨੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਿਆ ਹੈ l
 سے ۄڈبھاگیِ جِن٘ہ٘ہ نامُ دھِیائِیا 
بہت خوش قسمت وہ لوگ ہیں جنہوں نے نام پر دھیان دیا 

 ਸਦਾ ਗੁਣਦਾਤਾ ਮੰਨਿ ਵਸਾਇਆ ॥੩॥
sadaa gundaataa man vasaa-i-aa. ||3||
and have always enshrined in their minds the bestower of virtues. ||3||
 
ਅਤੇ ਆਪਣੇ ਗੁਣਾਂ ਦੀ ਦਾਤਿ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਵਸਾਇਆ ਹੈ 
 سدا گُنھداتا منّنِ ۄسائِیا  
 اور ہمیشہ ان کے ذہنوں میں فضائل کا عطا کرنے والا ٹھہرایا ہے

 ਜੋ ਗੁਣ ਸੰਗ੍ਰਹੈ ਤਿਨ੍ਹ੍ਹ ਬਲਿਹਾਰੈ ਜਾਉ ॥
jo gun sangrahai tinH balihaarai jaa-o.
I dedicate myself to those who gather these virtues.
 
ਜਿਹੜੇ ਨੇਕੀਆਂ ਨੂੰ ਇਕੱਤਰ ਕਰਦੇ ਹਨਉਨ੍ਹਾਂ ਉਤੋਂ ਮੈਂ ਕੁਰਬਾਨ ਜਾਂਦਾ ਹਾਂ
 جو گُنھ سنّگ٘رہےَ تِن٘ہ٘ہ بلِہارےَ جاءُ 
 میں خود کو ان لوگوں کے لئے وقف کرتا ہوں جو ان خوبیوں کو جمع کرتے ہیں

 ਦਰਿ ਸਾਚੈ ਸਾਚੇ ਗੁਣ ਗਾਉ ॥
dar saachai saachay gun gaa-o.
Associating with them, I sing the praises of the eternal God.
 
(ਉਹਨਾਂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲਮੈਂ ਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਦਰ ਤੇ (ਟਿਕ ਕੇਉਸ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇ ਦੇ ਗੁਣ ਗਾਂਦਾ ਹਾਂ
 درِ ساچےَ ساچے گُنھ گاءُ 
ان کے ساتھ وابستہ ہوں ، میں ابدی خدا کی حمد گاتا ہوں 

 ਆਪੇ ਦੇਵੈ ਸਹਜਿ ਸੁਭਾਇ ॥
aapay dayvai sahj subhaa-ay.
The one, whom God blesses with these virtues, remains in a state of equipoise.
ਗੁਣਾਂ ਦੀ ਦਾਤਿ ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਦੇਂਦਾ ਹੈਉਹ ਮਨੁੱਖ ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ ਵਿਚ ਟਿਕਦਾ ਹੈ ਪ੍ਰੇਮ ਵਿਚ ਜੁੜਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 آپے دیۄےَ سہجِ سُبھاءِ  
(3) سہج سبھائے ۔ قدرتاً
۔ اسے وہی پیتا ہے جسے خدا خود پلاتا ہے ۔ رحمت مرشد سے الہٰی لطف پایئیا جاتا ہے

 ਨਾਨਕ ਕੀਮਤਿ ਕਹਣੁ ਨ ਜਾਇ ॥੪॥੨॥੪੧॥
naanak keemat kahan na jaa-ay. ||4||2||41||
O’ Nanak, the worth of such a fortunate person cannot be described. ||4||2||41||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਉਸ ਦੇ ਉੱਚੇ ਜੀਵਨ ਦਾਮੁੱਲ ਨਹੀਂ ਦੱਸਿਆ ਜਾ ਸਕਦਾ ੪੧
 نانک کیِمتِ کہنھُ ن جاءِ ੪੧ 
 اے نانک الہٰی نام میں مجذوب ہوکر انسان بلند روحانی زندگی پاتا ہے

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੩ ॥
aasaa mehlaa 3.
Raag Aasaa, Third Guru:
 آسا مہلا   
 ਸਤਿਗੁਰ ਵਿਚਿ ਵਡੀ ਵਡਿਆਈ ॥
satgur vich vadee vadi-aa-ee.
The true Guru has this great virtue
 
ਸਤਿਗੁਰੂ ਵਿਚ ਇਹ ਵੱਡਾ ਭਾਰਾ ਗੁਣ ਹੈ,
 ستِگُر ۄِچِ ۄڈیِ ۄڈِیائیِ  
سچے گرو کی یہ بڑی خوبی ہے

 ਚਿਰੀ ਵਿਛੁੰਨੇ ਮੇਲਿ ਮਿਲਾਈ ॥
chiree vichhunay mayl milaa-ee.
that he unites even those persons with God who have been separated from Him for a long time.
ਕਿ ਉਹ ਚਿਰੰਕਾਲ (ਅਨੇਕਾਂ ਜਨਮਾਂਦੇ ਵਿਛੁੜੇ ਹੋਏ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੋੜ ਦੇਂਦਾ ਹੈ
 چِریِ ۄِچھُنّنے میلِ مِلائیِ 
کہ ان لوگوں کو خدا کے ساتھ جوڑ دیتا ہے جو ایک عرصے سے اس سے جدا ہوئے ہیں

 ਆਪੇ ਮੇਲੇ ਮੇਲਿ ਮਿਲਾਏ ॥
aapay maylay mayl milaa-ay.
God Himself unites a person with the Guru and then through the Guru attunes that person to Himself.
ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ (ਗੁਰੂਮਿਲਾਂਦਾ ਹੈਗੁਰੂ ਮਿਲਾ ਕੇ ਆਪਣੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੋੜਦਾ ਹੈ,
 آپے میلے میلِ مِلاۓ  
خدا خود کسی شخص کو گرو کے ساتھ جوڑتا ہے اور پھر گرو کے توسط سے اس شخص کو اپنے ساتھ جوڑ دیتا ہے

 ਆਪਣੀ ਕੀਮਤਿ ਆਪੇ ਪਾਏ ॥੧॥
aapnee keemat aapay paa-ay. ||1||
This way God Himself makes one realize the worth of Naam. ||1||
 
ਤੇ (ਇਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਜੀਵਾਂ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚਆਪਣੇ ਨਾਮ ਦੀ ਕਦਰ ਆਪ ਹੀ ਪੈਦਾ ਕਰਦਾ ਹੈ 
 آپنھیِ کیِمتِ آپے پاۓ 
اس طرح خدا خود ایک شخص کو نام کی قدر کا احساس دلاتا ہے

 ਹਰਿ ਕੀ ਕੀਮਤਿ ਕਿਨ ਬਿਧਿ ਹੋਇ ॥
har kee keemat kin biDh ho-ay.
In what way can the worth of God be determined?
 
ਕਿਸ ਤਰੀਕੇ ਨਾਲ ਮਨੁੱਖ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦੀ ਕਦਰ ਪੈਦਾ ਹੋਵੇ?
 ہرِ کیِ کیِمتِ کِن بِدھِ ہوءِ 
 کس طریقے سے الہٰی قدروقیمت کا پتہ چلے 

 ਹਰਿ ਅਪਰੰਪਰੁ ਅਗਮ ਅਗੋਚਰੁ ਗੁਰ ਕੈ ਸਬਦਿ ਮਿਲੈ ਜਨੁ ਕੋਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
har aprampar agam agochar gur kai sabad milai jan ko-ay. ||1|| rahaa-o.
God is infinite, profound and incomprehensible, through the Guru’s teachings some rare person may realize Him. ||1||Pause||
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਪਰੇ ਤੋਂ ਪਰੇ ਹੈਪਰਮਾਤਮਾ ਅਪਹੁੰਚ ਹੈਪਰਮਾਤਮਾ ਤਕ ਗਿਆਨਇੰਦ੍ਰਿਆਂ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਪਹੁੰਚ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦੀ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਹੀ ਕੋਈ ਵਿਰਲਾ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਮਿਲਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 ہرِ اپرنّپرُ اگم اگوچرُ گُر کےَ سبدِ مِلےَ جنُ کوءِ  رہاءُ 
خدا لامحدود ، گہرا اور سمجھ سے باہر ہے ، گرو کی تعلیمات کے ذریعہ کوئی نادر شخص ہی اس کا ادراک کرسکتا ہے ۔ رہاو

 ਗੁਰਮੁਖਿ ਕੀਮਤਿ ਜਾਣੈ ਕੋਇ ॥
gurmukh keemat jaanai ko-ay.
Only a rare Guru’s follower knows God’s worth.
 
ਕੋਈ ਵਿਰਲਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦੀ ਕਦਰ ਸਮਝਦਾ ਹੈ
 گُرمُکھِ کیِمتِ جانھےَ کوءِ 
صرف ایک نایاب گرو کا پیروکار خدا کی قدر جانتا ہے 

 ਵਿਰਲੇ ਕਰਮਿ ਪਰਾਪਤਿ ਹੋਇ ॥
virlay karam paraapat ho-ay.
It is only a very rare person who by God’s grace attains the gift of God’s Name.
ਕਿਸੇ ਵਿਰਲੇ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਮੇਹਰ ਨਾਲਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 ۄِرلے کرمِ پراپتِ ہوءِ  
یہ صرف ایک نایاب فرد ہے جسے خدا کے فضل سے خدا کے نام کا تحفہ مل جاتا ہے

 ਊਚੀ ਬਾਣੀ ਊਚਾ ਹੋਇ ॥
oochee banee oochaa ho-ay.
Through the sublime word of the Guru one acquires high moral character.
 
ਸ਼੍ਰੇਸਟ ਗੁਰਬਾਣੀ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਮਨੁੱਖ ਉੱਚੇ ਜੀਵਨ ਵਾਲਾ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 اوُچیِ بانھیِ اوُچا ہوءِ 
گرو کے عمدہ الفاظ کے ذریعہ ایک اعلی اخلاقی کردار کو حاصل کرتا ہے 

 ਗੁਰਮੁਖਿ ਸਬਦਿ ਵਖਾਣੈ ਕੋਇ ॥੨॥
gurmukh sabad vakhaanai ko-ay. ||2||
A rare Guru’s follower meditates on God’s Name through the Guru’s word.||2||
ਕੋਈ ਵਿਰਲਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈ ਕੇ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਦਾ ਹੈ  
 گُرمُکھِ سبدِ ۄکھانھےَ کوءِ 
گرو کے چند پیروکار ہی گرو کے کلام کے ذریعہ خدا کے نام پر غور کرتا ہے

 ਵਿਣੁ ਨਾਵੈ ਦੁਖੁ ਦਰਦੁ ਸਰੀਰਿ ॥
vin naavai dukh darad sareer.
Without meditating on God’s Name, one’s body is afflicted with pain and agony of vices.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਨ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਸਰੀਰ ਵਿਚ (ਵਿਕਾਰਾਂ ਦਾਦੁੱਖ ਰੋਗ ਪੈਦਾ ਹੋਇਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ,
 ۄِنھُ ناۄےَ دُکھُ دردُ سریِرِ 
خدا کے نام پر غور کیے بغیر جسم کو درد اور تکلیفوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے

 ਸਤਿਗੁਰੁ ਭੇਟੇ ਤਾ ਉਤਰੈ ਪੀਰ ॥
satgur bhaytay taa utrai peer.
but when one meets and follow the teachings of the True Guru, then that pain is removed.
ਜਦੋਂ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਗੁਰੂ ਮਿਲਦਾ ਹੈਤਦੋਂ ਉਸ ਦਾ ਇਹ ਦੁੱਖ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 ستِگُرُ بھیٹے تا اُترےَ پیِر 
لیکن جب کوئی سچے گرو کی تعلیمات پر پورا اترتا ہے اور اس پر عمل کرتا ہے تو پھر وہ تکلیف دور ہوجاتی ہے

 ਬਿਨੁ ਗੁਰ ਭੇਟੇ ਦੁਖੁ ਕਮਾਇ ॥
bin gur bhaytay dukh kamaa-ay.
Without following the Guru’s teachings, one does such deeds which bring suffering.
 
ਗੁਰੂ ਨੂੰ ਮਿਲਣ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਮਨੁੱਖ ਉਹੀ ਕਰਮ ਕਮਾਂਦਾ ਹੈ ਜੋ ਦੁੱਖ ਪੈਦਾ ਕਰਨ,
 بِنُ گُر بھیٹے دُکھُ کماءِ  
گرو کی تعلیمات پر عمل کیے بغیر انسان ایسے کام کرتا ہے جس سے تکلیف ہوتی ہے۔ 

 ਮਨਮੁਖਿ ਬਹੁਤੀ ਮਿਲੈ ਸਜਾਇ ॥੩॥
manmukh bahutee milai sajaa-ay. ||3||
The self-willed person receives even more punishment. ||3||
 
ਆਪਣੇ ਮਨ ਦੇ ਪਿਛੇ ਤੁਰਨ ਵਾਲੇ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਸਦਾ ਬਹੁਤ ਸਜ਼ਾ ਮਿਲਦੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ 
 منمُکھِ بہُتیِ مِلےَ سجاءِ 
انا پرست کو زیادہ سزا ملتی ہے

 ਹਰਿ ਕਾ ਨਾਮੁ ਮੀਠਾ ਅਤਿ ਰਸੁ ਹੋਇ ॥
har kaa naam meethaa at ras ho-ay.
The nectar of God’s Name is so very sweet.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ (ਇਕ ਐਸਾ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਹੈ ਜੋਮਿੱਠਾ ਹੈਬੜੇ ਰਸ ਵਾਲਾ ਹੈ
 ہرِ کا نامُ میِٹھا اتِ رسُ ہوءِ 
الہٰی نام مزیدار اور میٹھا ہے 

 ਪੀਵਤ ਰਹੈ ਪੀਆਏ ਸੋਇ ॥
peevat rahai pee-aa-ay so-ay.
He alone partakes in this nectar, whom God Himself leads to it.
 
ਉਹੀ ਮਨੁੱਖ ਇਹ ਨਾਮਰਸ ਪੀਂਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈਜਿਸ ਨੂੰ ਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਆਪ ਪਿਲਾਏ
 پیِۄت رہےَ پیِیاۓ سوءِ  
رسمی طور پر اور رواجا تو سبھ کہتے ہیں لیکن وہی اپنی بخشش اور کرم و عنایت سے ملاتا ہے ۔ زبانی باتوں سے لاحاصل ہے 

 ਗੁਰ ਕਿਰਪਾ ਤੇ ਹਰਿ ਰਸੁ ਪਾਏ ॥
gur kirpaa tay har ras paa-ay.
Only by Guru’s grace, does one enjoy the divine elixir of God’s Name.
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਹੀ ਮਨੁੱਖ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮਜਲ ਦਾ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦਾ ਹੈ
 گُر کِرپا تے ہرِ رسُ پاۓ  
رحمت مرشد سے دل میں بستا ہے

 ਨਾਨਕ ਨਾਮਿ ਰਤੇ ਗਤਿ ਪਾਏ ॥੪॥੩॥੪੨॥
naanak naam ratay gat paa-ay. ||4||3||42||
O’ Nanak, imbued with Naam, one attains high spiritual status.||4||3||42||
ਹੇ ਨਾਨਕਨਾਮਰੰਗਿ ਵਿਚ ਰੰਗੀਜ ਕੇ ਮਨੁੱਖ ਉੱਚੀ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲੈਂਦਾ ਹੈ ੪੨
 نانک نامِ رتے گتِ پاۓ ੪੨
اے نانک سبق مرشد سے انسان کی زندگی پاک ہو جاتی ہے 

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੩ ॥
aasaa mehlaa 3.
Raag Aasaa, Third Guru:
 آسا مہلا   
 ਮੇਰਾ ਪ੍ਰਭੁ ਸਾਚਾ ਗਹਿਰ ਗੰਭੀਰ ॥
mayraa parabh saachaa gahir gambheer.
My God is eternal, unfathomable and profound
 
ਪਿਆਰਾ ਪ੍ਰਭੂ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਹੈਡੂੰਘਾ ਹੈ ਤੇ ਵੱਡੇ ਜਿਗਰੇ ਵਾਲਾ ਹੈ
 میرا پ٘ربھُ ساچا گہِر گنّبھیِر  
گہر۔ گنبھیر۔ نہایت سنجیدہ۔
خدا ہمیشہ ہرجامکمل طورپر بستا ہے

 ਸੇਵਤ ਹੀ ਸੁਖੁ ਸਾਂਤਿ ਸਰੀਰ ॥
sayvat hee sukh saaNt sareer.
A sense of peace and tranquility arises in the body by meditating on Naam.
 
ਉਸ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕੀਤਿਆਂ ਸਰੀਰ ਨੂੰ ਸੁਖ ਮਿਲਦਾ ਹੈਸ਼ਾਂਤੀ ਮਿਲਦੀ ਹੈ
 سیۄت ہیِ سُکھُ ساںتِ سریِر  
سیوت ۔ خدمت۔
جو انسان سبق مرشد پر عمل کرتا ہے حقیقی اور سچا لطف اُتھاتا ہے

 ਸਬਦਿ ਤਰੇ ਜਨ ਸਹਜਿ ਸੁਭਾਇ ॥
sabad taray jan sahj subhaa-ay.
God’s devotees intiutively swim across the worldly ocean of vices by meditating on Naam through the Guru’s word.
 
ਉਸ ਦੇ ਨਾਮ ਨਾਲ ਰੱਬ ਦੇ ਗੋਲੇ ਸੁਖੈਨ ਹੀ ਪਾਰ ਉਤਰ ਜਾਂਦੇ ਹਨ
 سبدِ ترے جن سہجِ سُبھاءِ  
سہج سبھائے ۔ قدرتی پیار۔
مرشد کے وسیلے سے دل سے خودی مٹا کر الہٰی محبت سے دنیاوی محبت ختم ہوتی ہے

 ਤਿਨ ਕੈ  ਹਮ ਸਦ ਲਾਗਹ ਪਾਇ ॥੧॥
tin kai ham sad laagah paa-ay. ||1||
I always humbly bow to such devotees. ||1||
 
ਮੈਂ ਸਦਾ ਉਹਨਾਂ ਦੀ ਚਰਨੀਂ ਲੱਗਦਾ ਹਾਂ 
 تِن کےَ ہم سد لاگہ پاءِ  
میں ہمیشہ عقیدت کے ساتھ ایسے عقیدت مندوں کو سجدہ کرتا ہوں