Urdu-Page-360

ਬਾਬਾ ਜੁਗਤਾ ਜੀਉ ਜੁਗਹ ਜੁਗ ਜੋਗੀ ਪਰਮ ਤੰਤ ਮਹਿ ਜੋਗੰ ॥
baabaa jugtaa jee-o jugah jug jogee param tant meh jogaN.
O’ Babba, one who is always attuned to God, is a true Yogi.
ਹੇ ਭਾਈਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦਾ ਪਰਮੇਸਰ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੋੜ ਹੋ ਗਿਆ ਹੈ ਉਹੀ ਜੁੜਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ ਉਹੀ ਅਸਲ ਜੋਗੀ ਹੈ
بابا جُگتا جیِءُ جُگہ جُگ جوگیِ پرم تنّت مہِ جوگنّ 
جگتا ۔ ملاپ شدہ ۔ جیؤ۔ انسان۔ جگہوجگ ہر مانے میں
اے بابا جی جو ہمیشہ خدا سے ملحق رہتا ہے وہ سچا یوگی ہے۔

 ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਨਾਮੁ ਨਿਰੰਜਨ ਪਾਇਆ ਗਿਆਨ ਕਾਇਆ ਰਸ ਭੋਗੰ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
amrit naam niranjan paa-i-aa gi-aan kaa-i-aa ras bhogaN. ||1|| rahaa-o.
One who has attained the ambrosial Name of the immaculate God enjoys the bliss of spiritual wisdom. ||1||Pause||
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਮਾਇਆਰਹਿਤ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਨਾਮ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰ ਲਿਆ ਹੈ ਉਹ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਸਦਾ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ  
انّم٘رِتُ نامُ نِرنّجن پائِیا گِیان کائِیا رس بھوگنّ  رہاءُ 
۔ انمرت نام۔ آب حیات نام۔ نرنجن۔ پاک۔ گیان ۔ علم ۔ کایئیا۔ جسم رس بھوگنگ۔لطف اُٹھاتا ہے۔(1) رہاؤ۔
ایک جس نے بے نیاز خدا کا نام لے لیا ہے اسے روحانی دانشمندی کا لطف حاصل ہے۔

 ਸਿਵ ਨਗਰੀ ਮਹਿ ਆਸਣਿ ਬੈਸਉ ਕਲਪ ਤਿਆਗੀ ਬਾਦੰ ॥
siv nagree meh aasan baisa-o kalap ti-aagee baadaN.
O’ Yogi, renouncing the thoughts of worldly strife and desires, I stay attuned to the thoughts of God.
ਹੇ ਜੋਗੀਮਨ ਦੀਆਂ ਕਲਪਨਾਂ ਅਤੇ ਦੁਨੀਆ ਵਾਲੇ ਝਗੜੇਝਾਂਝੇ ਛੱਡ ਕੇ ਮੈਂ ਕਲਿਆਨਸਰੂਪnਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਟਿਕ ਕੇ ਬੈਠਦਾ ਹਾਂ 
سِۄ نگریِ مہِ آسنھِ بیَسءُ کلپ تِیاگیِ بادنّ 
مطابقت رکھتا ہوں
اےیوگی ، دنیاوی کشمکش اور خواہشات کے افکار کو ترک کرتے ہوئے ، میں خدا کے خیالات سے مطابقت رکھتا ہوں۔

 ਸਿੰਙੀ ਸਬਦੁ ਸਦਾ ਧੁਨਿ ਸੋਹੈ ਅਹਿਨਿਸਿ ਪੂਰੈ ਨਾਦੰ ॥੨॥
sinyee sabad sadaa Dhun sohai ahinis poorai naadaN. ||2||
The word of the Guru is ringing within me day and night, which is like the melodious tune of the horn. ||2||
ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਗੁਰੂ ਦਾ ਸ਼ਬਦ ਗੱਜ ਰਿਹਾ ਹੈਇਹ ਹੈ ਸਿੰਙੀ ਦੀ ਮਿੱਠੀ ਸੁਹਾਵਣੀ ਸੁਰਜੇ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਹੋ ਰਹੀ ਹੈ ਦਿਨ ਰਾਤ ਮੇਰਾ ਮਨ ਗੁਰਸ਼ਬਦ ਦਾ ਨਾਦ ਵਜਾ ਰਿਹਾ ਹੈ 
سِنّگنْیِ سبدُ سدا دھُنِ سوہےَ اہِنِسِ پوُرےَ نادنّ 
جو ہارن کی مدھر دھن کی طرح ہے۔
گورو کا کلام میرے اندر دن رات بج رہا ہے ، جو ہارن کی مدھر دھن کی طرح ہے۔

 ਪਤੁ ਵੀਚਾਰੁ ਗਿਆਨ ਮਤਿ ਡੰਡਾ ਵਰਤਮਾਨ ਬਿਭੂਤੰ ॥
pat veechaar gi-aan mat dandaa varatmaan bibhootaN.
Reflection on God’s virtues is my begging bowl, awakened intellect is my staff, to deem God’s presence everywhere is the ashes I apply to my body.
ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣਾਂ ਦੀ ਵਿਚਾਰ ਹੈ ਮੇਰਾ ਖੱਪਰ ਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਡੂੰਘੀ ਸਾਂਝ ਵਾਲੀ ਮਤਿ ਮੇਰੇ ਹੱਥ ਵਿਚ ਡੰਡਾ ਹੈ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਹਰ ਥਾਂ ਮੌਜੂਦ ਵੇਖਣਾ ਮੇਰੇ ਵਾਸਤੇ ਪਿੰਡੇ ਤੇ ਮਲਣ ਵਾਲੀ ਸੁਆਹ ਹੈ 
پتُ ۄیِچارُ گِیان متِ ڈنّڈا ۄرتمان بِبھوُتنّ 
میری بھیک مانگنے و۔الا پیالہ
خدا کی خوبیوں پر غور کرنا ہی میری بھیک مانگنے والا پیالہ ہے ، بیدار عقل ہی میرا عملہ ہے ، ہر جگہ خدا کی موجودگی کو سمجھنا راکھ ہے جو میں اپنے جسم پر لاگو ہوں

 ਹਰਿ ਕੀਰਤਿ ਰਹਰਾਸਿ ਹਮਾਰੀ ਗੁਰਮੁਖਿ ਪੰਥੁ ਅਤੀਤੰ ॥੩॥
har keerat rahraas hamaaree gurmukh panth ateetaN. ||3||
To sing His praises is my daily routine and to live according to the Guru’s teachings is my ascetic path. ||3||
ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਲਾਹ ਮੇਰੀ ਰਹੁਰੀਤੀ ਹੈ ਅਤੇ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸਨਮੁਖ ਟਿਕੇ ਰਹਿਣਾ ਹੀ ਸਾਡਾ ਧਰਮਰਸਤਾ ਹੈ 
 ہرِ کیِرتِ رہراسِ ہماریِ گُرمُکھِ پنّتھُ اتیِتنّ 
مطابق زندگی گذارنا میرا طغیانی راستہ ہے
اس کی حمد گانا میرا روز کا معمول ہے اور گرو کی تعلیمات کے مطابق زندگی گذارنا میرا طغیانی راستہ ہے۔

 ਸਗਲੀ ਜੋਤਿ ਹਮਾਰੀ ਸੰਮਿਆ ਨਾਨਾ ਵਰਨ ਅਨੇਕੰ ॥
saglee jot hamaaree sammi-aa naanaa varan anaykaN.
To see God’s light in its myriad ways in all creatures is the wooden support for my arm.
ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਵਿਚ ਅਨੇਕਾਂ ਰੰਗਾਂਰੂਪਾਂ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਜੋਤਿ ਨੂੰ ਵੇਖਣਾਇਹ ਹੈ ਸਾਡੀ ਬੈਰਾਗਣ (ਲੱਕੜ ਆਦਿਕ ਦੀ ਟਿਕਟਿਕੀ)
سگلیِ جوتِ ہماریِ سنّمِیا نانا ۄرن انیکنّ 
میرے بازو کی لکڑی کا سہارا ہے۔
خدا کی روشنی کو تمام مخلوقات میں ہزاروں طریقوں سے دیکھنا میرے بازو کی لکڑی کا سہارا ہے۔

 ਕਹੁ ਨਾਨਕ ਸੁਣਿ ਭਰਥਰਿ ਜੋਗੀ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਲਿਵ ਏਕੰ ॥੪॥੩॥੩੭॥
kaho naanak sun bharthar jogee paarbarahm liv aykaN. ||4||3||37||
Nanak says, listen O’ Bharthar Yogi, to remain attuned to the all-pervading God is my only passion. ||4||3||37||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਆਖ-) ਹੇ ਭਰਥਰੀ ਜੋਗੀਸੁਣਮੈਂ ਕੇਵਲ ਸ਼੍ਰੋਮਣੀ ਸਾਹਿਬ ਨੂੰ ਹੀ ਪਿਆਰ ਕਰਦਾ ਹਾਂ ੩੭
 کہُ نانک سُنھِ بھرتھرِ جوگیِ پارب٘رہم لِۄ ایکنّ
’’ بھرتھر یوگی ‘‘ ، سراسر خدا 
نانک نے کہا ، اے سنو بھرتھر یوگی سراسر خدا کی طرف راغب رہنا میرا واحد جنون ہے۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ॥
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
 ਗੁੜੁ ਕਰਿ ਗਿਆਨੁ ਧਿਆਨੁ ਕਰਿ ਧਾਵੈ ਕਰਿ ਕਰਣੀ ਕਸੁ ਪਾਈਐ ॥
gurh kar gi-aan Dhi-aan kar Dhaavai kar karnee kas paa-ee-ai.
O’ Yogi, (to distill the divine Nectar), make spiritual wisdom as molasses, meditation on God’s Name as scented flowers and good deeds as the herbs.
ਹੇ ਜੋਗੀਬ੍ਰਹਿਮਬੋਧ ਨੂੰ ਗੁੜ ਬਣਾਸਿਮਰਨ ਨੂੰ ਮਹੂਏ ਦੇ ਫੁੱਲ ਬਣਾਉੱਚੇ ਆਚਰਨ ਨੂੰ ਕਿੱਕਰਾਂ ਦੇ ਸੱਕ ਬਣਾ ਕੇ ਇਹਨਾਂ ਵਿਚ ਰਲਾ ਦੇ
 گُڑُ کرِ گِیانُ دھِیانُ کرِ دھاۄےَ کرِ کرنھیِ کسُ پائیِئےَ 
دھاوے ۔ مہوئے کے پھول۔ کر ۔ اعمال۔ کس۔ ککر کاھال۔
اے یوگی روحانی دانشم کو گوڑ کی مانند بنائیں ، خدا کے نام پر غور کریں بطور بوٹیوں کی طرح خوشبو دار پھول اور نیک کام۔

 ਭਾਠੀ ਭਵਨੁ ਪ੍ਰੇਮ ਕਾ ਪੋਚਾ ਇਤੁ ਰਸਿ ਅਮਿਉ ਚੁਆਈਐ ॥੧॥
bhaathee bhavan paraym kaa pochaa it ras ami-o chu-aa-ee-ai. ||1||
Let burning away the bodily attachments be the furnace and loving adoration of God be the coolant to obtain a steady stream of divine nectar.||1||
ਸਰੀਰਕ ਮੋਹ ਨੂੰ ਭੱਠੀ ਤੇ ਪ੍ਰਭੂਪਿਆਰ ਨੂੰ ਠੰਡਾ ਪੋਚਾ ਬਣਾ ਇਸ ਤਰੀਕੇ ਨਾਲ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦਾਤਾ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਨਿਕਲੇਗਾ 
بھاٹھیِ بھۄنُ پ٘ریم کا پوچا اِتُ رسِ امِءُ چُیائیِئےَ 
بھون۔ یقین ۔ پوچا۔ صفائی یا ٹھنڈا کرنے کے لئے صفائی ۔ ات رس اسی طرح سے ۔
جسمانی اٹیچوں کو جلا دینا اور خدائی امتیاز کا مستقل ندی حاصل کرنے کے لئے خدا کی محبت اور پیار خدا کی محبت ہے۔

 ਬਾਬਾ ਮਨੁ ਮਤਵਾਰੋ ਨਾਮ ਰਸੁ ਪੀਵੈ ਸਹਜ ਰੰਗ ਰਚਿ ਰਹਿਆ ॥
baabaa man matvaaro naam ras peevai sahj rang rach rahi-aa.
O’ Baba, by drinking this divine nectar the mind becomes tranquil and intuitively remains imbued with God’s love.
ਹੇ ਬਜੁਰਗਵਾਰਨਾਮ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਨੂੰ ਪਾਨ ਕਰਨ ਦੁਆਰਾ ਮਨੂ ਖੀਵਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਅਤੇ ਪ੍ਰਭੂਪ੍ਰੀਤ ਵਿੱਚ ਸੁਖੈਨ ਹੀ ਲੀਨ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
بابا منُ متۄارو نام رسُ پیِۄےَ سہج رنّگ رچِ رہِیا 
امیؤ ۔ انمرت۔ اب حیات۔ زندگی بخشنے والا پانی۔ (1)
اے بابا یہ آسمانی امرت پینے سے دماغ پرسکون ہوجاتا ہے اور بدیہی طور پر خدا کی محبت میں رنگین رہتا ہے۔ 

 ਅਹਿਨਿਸਿ ਬਨੀ ਪ੍ਰੇਮ ਲਿਵ ਲਾਗੀ ਸਬਦੁ ਅਨਾਹਦ ਗਹਿਆ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
ahinis banee paraym liv laagee sabad aanaahad gahi-aa. ||1|| rahaa-o.
By listening the continuous melody of the Guru’s divine word, the mind always remains attuned to the loving adoration of God. ||1||Pause||
ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦੇ ਪਿਆਰ ਨਾਲ ਬਿਰਤੀ ਜੋੜਣ ਅਤੇ ਬੈਕੁੰਠੀ ਕੀਰਤਨ ਸੁਣਨ ਦੁਆਰਾਰਾਤ ਦਿਨ ਸਫਲ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨ  ਰਹਾਉ 
اہِنِسِ بنیِ پ٘ریم لِۄ لاگیِ سبدُ اناہد گہِیا  رہاءُ 
انا حد۔ بے آواز ۔ مسلسل لگاتار۔ گہیئا۔ پکڑیا۔ اختیار کیا (1) رہاؤ۔
گرو کے آسمانی کلام کی مسلسل راگ کو سن کر ، ذہن ہمیشہ خدا کی محبت انگیز تقویت پر راضی رہتا ہے۔

 ਪੂਰਾ ਸਾਚੁ ਪਿਆਲਾ ਸਹਜੇ ਤਿਸਹਿ ਪੀਆਏ ਜਾ ਕਉ ਨਦਰਿ ਕਰੇ ॥
 pooraa saach pi-aalaa sehjay tiseh pee-aa-ay jaa ka-o nadar karay.
The Perfect God imperceptibly gives this drink of divine elixir to the one upon whom He casts His glance of grace.
ਸਭ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਮਾਲਕ ਪ੍ਰਭੂ ਅਡੋਲਤਾ ਵਿਚ ਰੱਖ ਕੇ ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਇਹ ਪਿਆਲਾ ਪਿਲਾਂਦਾ ਹੈ ਜਿਸ ਉਤੇ ਆਪ ਮੇਹਰ ਦੀ ਨਜ਼ਰ ਕਰਦਾ ਹੈ
پوُرا ساچُ پِیالا سہجے تِسہِ پیِیاۓ جا کءُ ندرِ کرے 
متوارو۔ مست۔ بیخود۔ سہج۔ روحانی سکون ۔ رنگ ۔
کامل خدا نہایت بخشش کے ساتھ یہ الہی مشروب پیتے ہیں جس پر وہ اپنے فضل کا نظارہ کرتا ہے۔

 ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਕਾ ਵਾਪਾਰੀ ਹੋਵੈ ਕਿਆ ਮਦਿ ਛੂਛੈ ਭਾਉ ਧਰੇ ॥੨॥
amrit kaa vaapaaree hovai ki-aa mad chhoochhai bhaa-o Dharay. ||2||
One who tastes this divine elixir, how could he ever love the worldly wine? ||2||
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੇਣ ਵਾਲੇ ਇਸ ਰਸ ਦਾ ਵਪਾਰੀ ਬਣ ਜਾਏ ਉਹ ਹੋਛੇ ਸ਼ਰਾਬ ਨਾਲ ਪਿਆਰ ਨਹੀਂ ਕਰਦਾ 
انّم٘رِت کا ۄاپاریِ ہوۄےَ کِیا مدِ چھوُچھےَ بھاءُ دھرے 
پریم۔ رچ رہیا۔ مجذوب ہوا۔ اہنس۔ روز وشب
جو اس الہی امرت کا مزہ چکھا ، وہ کبھی بھی دنیاوی شراب سے کس طرح پیار کرسکتا ہے؟

 ਗੁਰ ਕੀ ਸਾਖੀ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਬਾਣੀ ਪੀਵਤ ਹੀ ਪਰਵਾਣੁ ਭਇਆ ॥
gur kee saakhee amrit banee peevat hee parvaan bha-i-aa.
The Guru’s teachings is like the ambrosial nectar, one is approved in God’s court by partaking this nectar.
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਿੱਖਿਆ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੇਣ ਵਾਲੀ ਹੈ ਇਸ ਨੂੰ ਪਾਨ ਕਰਦੇ ਸਾਰ ਬੰਦਾ (ਹਰੀਦਰਕਬੂਲ ਪੈ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 گُر کیِ ساکھیِ انّم٘رِت بانھیِ پیِۄت ہیِ پرۄانھُ بھئِیا 
۔ دن رات۔ پورا ساچ۔ کامل یا مکمل سچ۔ یعنی خدا پیالہ ۔
گورو کی تعلیمات امتیازی امرت کی طرح ہیں ، اس امرت کا حصہ لے کر خدا کے دربار میں ایک کی منظوری مل جاتی ہے۔

 ਦਰ ਦਰਸਨ ਕਾ ਪ੍ਰੀਤਮੁ ਹੋਵੈ ਮੁਕਤਿ ਬੈਕੁੰਠੈ ਕਰੈ ਕਿਆ ॥੩॥
dar darsan kaa pareetam hovai mukat baikunthay karai ki-aa. ||3||
The one who becomes a lover of God’s court and His blessed vision, of what use is liberation or paradise to him ||3|
ਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਦਰ ਦੇ ਦੀਦਾਰ ਦਾ ਪ੍ਰੇਮੀ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈਉਸ ਨੂੰ ਨਾਹ ਮੁਕਤੀ ਦੀ ਲੋੜ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ ਨਾਹ ਬੈਕੁੰਠ ਦੀ 
 در درسن کا پ٘ریِتمُ ہوۄےَ مُکتِ بیَکُنّٹھےَ کرےَ کِیا 
بیکنٹھے ۔ بہشت سبق۔ سمجھے قدرتی ۔ ندر ۔ نگاہ۔ شفقت ۔ چھوچھے ۔ بدمزہ۔ بھاؤ پیار۔ (2)
وہ جو خدا کے دربار اور اس کی بصیرت نگاہ سے محبت کرتا ہے ، اس کے لئے آزادی یا جنت کا کیا فائدہ ہے

 ਸਿਫਤੀ ਰਤਾ ਸਦ ਬੈਰਾਗੀ ਜੂਐ ਜਨਮੁ ਨ ਹਾਰੈ ॥
 siftee rataa sad bairaagee joo-ai janam na haarai.
Imbued with God’s Praises, one is forever a renunciate and he does not loose in the game of life.
ਜੋ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸ਼ਲਾਘਾ ਨਾਲ ਰੰਗੀਜਿਆ ਹੈਉਹ ਸਦੀਵ ਹੀ ਤਿਆਗੀ ਹੈ ਅਤੇ ਆਪਣਾ ਜੀਵਨ ਜੂਏ ਵਿੱਚ ਨਹੀਂ ਹਾਰਦਾ
سِپھتیِ رتا سد بیَراگیِ جوُئےَ جنمُ ن ہارےَ 
ساکھی۔ سبق ۔ نصیحت ۔ تعلیم ۔ پروان۔ قبول۔ دردرشن ۔ دیدارور ۔
خدا کی حمد و ثنا کے ساتھ مشغول ، ایک ہمیشہ کے لئے مستغنی ہے اور وہ زندگی کے کھیل میں کھوتا نہیں ہے۔

 ਕਹੁ ਨਾਨਕ ਸੁਣਿ ਭਰਥਰਿ ਜੋਗੀ ਖੀਵਾ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਧਾਰੈ ॥੪॥੪॥੩੮॥
kaho naanak sun bharthar jogee kheevaa amrit Dhaarai. ||4||4||38||
Nanak says, listen, O Bharthar Yogi, such a person always remains intoxicated with the nectar of God’s Name. ||4||4||38||
ਗੁਰੂ ਜੀ ਆਖਦੇ ਹਨਕੰਨ ਕਰ ਹੇ ਪਰਬਰੀ ਜੋਗੀਉਹ ਤਾਂ ਅਟੱਲ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦਾਤੇ ਆਨੰਦ ਵਿਚ ਮਸਤ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ੩੮
 کہُ نانک سُنھِ بھرتھرِ جوگیِ کھیِۄا انّم٘رِت دھارےَ
پریتم۔ پیارا۔ مگت۔ نجات۔ آزادی ۔ ۔ (3)
نانک نے کہا ، سنو اے بھرتھر یوگی ، ایسا شخص ہمیشہ خدا کے نام کے امرت کا نشہ کرتا ہے۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ॥
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
  ਖੁਰਾਸਾਨ ਖਸਮਾਨਾ ਕੀਆ ਹਿੰਦੁਸਤਾਨੁ ਡਰਾਇਆ ॥
khurasan khasmana kee-aa hindustan daraa-i-aa.
Having conquered Khurasaan, Baabar left it under the care of somebody else and went ahead to terrify Hindustan.
ਖੁਰਾਸਾਨ ਦੀ ਸਪੁਰਦਗੀ (ਕਿਸੇ ਹੋਰ ਨੂੰਕਰ ਕੇ (ਬਾਬਰ ਮੁਗ਼ਲ ਨੇ ਹਮਲਾ ਕਰ ਕੇਹਿੰਦੁਸਤਾਨ ਨੂੰ  ਸਹਮ ਪਾਇਆ
 کھُراسان کھسمانا کیِیا ہِنّدُستانُ ڈرائِیا 
خراسان ۔ وسط ایشیا میں ایک ملک ہے۔ خصمانہ۔ اپنایئیا۔ اپنا سمجھا ۔ ڈرایئیا۔ خوفزدہ کیا۔
خراسان پر فتح حاصل کرنے کے بعد ، بابر نے اسے کسی اور کی دیکھ بھال میں چھوڑ دیا اور ہندوستان کو خوفزدہ کرنے کے لئے آگے بڑھا۔

 ਆਪੈ ਦੋਸੁ ਨ ਦੇਈ ਕਰਤਾ ਜਮੁ ਕਰਿ ਮੁਗਲੁ ਚੜਾਇਆ ॥
aapai dos na day-ee kartaa jam kar mughal charhaa-i-aa.
The Creator doesn’t take the blame on Himself; to punish the Rulers of India, God sent Babar, the demon of death to attack India.
ਕਰਤਾਰ ਆਪਣੇ ਉਤੇ ਇਤਰਾਜ਼ ਨਹੀਂ ਆਉਣ ਦੇਂਦਾ ਹਾਕਮਾਂ ਨੂੰ ਦੰਡ ਦੇਣ ਲਈ ਕਰਤਾਰ ਨੇ ਬਾਬਰ ਨੂੰ ਜਮਰਾਜ ਬਣਾ ਕੇ ਹਿੰਦੁਸਤਾਨ ਤੇ ਚਾੜ੍ਹ ਦਿੱਤਾ
آپےَ دوسُ ن دیئیِ کرتا جمُ کرِ مُگلُ چڑائِیا 
دوس۔ گناہگار۔ کرتا۔ کرتار۔ کارساز۔ چرھایئیا۔ حملہ آور ہوا۔
خالق اپنے اوپر الزام نہیں لیتے ہیں۔ ہندوستان کے حکمرانوں کو سزا دینے کے لئے ، خدا نے بابر ، موت کے فرشتہ کو ہندوستان پر حملہ کرنے کے لئے بھیجا۔

 ਏਤੀ ਮਾਰ ਪਈ ਕਰਲਾਣੇ ਤੈਂ ਕੀ ਦਰਦੁ ਨ ਆਇਆ ॥੧॥
aytee maar pa-ee karlaanay taiN kee darad na aa-i-aa. ||1||
During the attack, so much tyranny was inflicted on the people that they cried out in pain. In spite of all this did You not feel any compassion? ||1||
ਇਤਨੀ ਮਾਰ ਪਈ ਕਿ ਉਹ (ਹਾਇ ਹਾਇਪੁਕਾਰ ਉਠੇ ਕੀ (ਇਹ ਸਭ ਕੁਝ ਵੇਖ ਕੇਤੈਨੂੰ ਉਹਨਾਂ ਉਤੇ ਤਰਸ ਨਹੀਂ ਆਇਆ 
ایتیِ مار پئیِ کرلانھے تیَں کیِ دردُ ن آئِیا 
ایتی ۔ اتنی ۔ مار ظلم وجبراستم۔ کر لانے ۔ آہ واری۔ تین کی کیا تجھے ۔ درد ۔ ترس ۔ دکھ کا احساس ۔ (1)
حملے کے دوران لوگوں پر اتنا ظلم ڈھایا گیا کہ وہ درد سے پکار اٹھے۔ اس سب کے باوجود بھی آپ کو کوئی ترس نہیں آیا؟

 ਕਰਤਾ ਤੂੰ ਸਭਨਾ ਕਾ ਸੋਈ ॥
kartaa tooN sabha kaa so-ee.
O’ Creator, You are the cherisher of all.
ਹੇ ਕਰਤਾਰਤੂੰ ਸਭਨਾਂ ਹੀ ਜੀਵਾਂ ਦੀ ਸਾਰ ਰੱਖਣ ਵਾਲਾ ਹੈਂ
 کرتا توُنّ سبھنا کا سوئیِ 
سبھناں ۔ سبھ کا ۔ سوئی وہی سکتا ہے ۔
اے تخلیق کار آپ سب کا چرچا ہے۔

 ਜੇ ਸਕਤਾ ਸਕਤੇ ਕਉ ਮਾਰੇ ਤਾ ਮਨਿ ਰੋਸੁ ਨ ਹੋਈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
jay saktaa saktay ka-o maaray taa man ros na ho-ee. ||1|| rahaa-o.
If a powerful person hits another equally powerful person, then one doesn’t feel bad in the mind. ||1||Pause||
ਜੇ ਕੋਈ ਜ਼ੋਰਾਵਰ ਜ਼ੋਰਾਵਰ ਨੂੰ ਮਾਰ ਕੁਟਾਈ ਕਰੇ ਤਾਂ ਵੇਖਣ ਵਾਲਿਆਂ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਗੁੱਸਾਗਿਲਾ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ  ਰਹਾਉ 
جے سکتا سکتے کءُ مارے تا منِ روسُ ن ہوئیِ  رہاءُ 
طاقتور ۔ تاں تب۔ روس ۔ گلہ۔ شکوہ۔ غصہ (رہاؤ) ۔
اگر ایک طاقتور شخص دوسرے مساوی طاقتور فرد سے ٹکرا جاتا ہے تو کسی کے دماغ میں برا نہیں لگتا ہے۔

 ਸਕਤਾ ਸੀਹੁ ਮਾਰੇ ਪੈ ਵਗੈ ਖਸਮੈ ਸਾ ਪੁਰਸਾਈ ॥
saktaa seehu maaray pai vagai khasmai saa pursaa-ee.
But if a powerful tiger attacks a flock of sheep and kills them, then its master must answer as to why he didn’t protect the sheep?
ਪਰ ਜੇ ਕੋਈ ਸ਼ੇਰ (ਵਰਗਾਜ਼ੋਰਾਵਰ ਗਾਈਆਂ ਦੇ ਵੱਗ (ਵਰਗੇ ਕਮਜ਼ੋਰ ਨਿਹੱਥਿਆਂਉਤੇ ਹੱਲਾ ਕਰ ਕੇ ਮਾਰਨ ਨੂੰ  ਪਏਤਾਂ ਇਸ ਦੀ ਪੁੱਛ (ਵੱਗ ਦੇਖਸਮ ਨੂੰ ਹੀ ਹੁੰਦੀ ਹੈ
سکتا سیِہُ مارے پےَ ۄگےَ کھسمےَ سا پُرسائیِ 
سینہہ۔ شیر ۔ مارے ۔ حملہ اورہو۔ وگ۔ گایئوں کے گروہ۔ جھنڈ۔ خسمے۔ مالک۔ پرسائی ۔
لیکن اگر ایک طاقتور شیر بھیڑوں کے ریوڑ پر حملہ کرکے انھیں مار ڈالتا ہے تو پھر اس کے آقا کو جواب دینا ہوگا کہ اس نے بھیڑوں کی حفاظت کیوں نہیں کی؟

 ਰਤਨ ਵਿਗਾੜਿ ਵਿਗੋਏ ਕੁਤੀ ਮੁਇਆ ਸਾਰ ਨ ਕਾਈ ॥
ratan vigaarh vigo-ay kuteeN mu-i-aa saar na kaa-ee.
These dog like Mughal soldiers have so mutilated the jewel-like bodies of innocent people that nobody can recognize or take care of the dead.
ਮਨੁੱਖਰੂਪ ਮੁਗ਼ਲ ਕੁੱਤਿਆਂ ਨੇ ਸੋਹਣੇ ਬੰਦਿਆਂ ਨੂੰ ਮਾਰ ਮਾਰ ਕੇ ਮਿੱਟੀ ਵਿਚ ਰੋਲ ਦਿੱਤਾ ਹੈਮਰੇ ਪਿਆਂ ਦੀ ਕੋਈ ਸਾਰ ਹੀ ਨਹੀਂ ਲੈਂਦਾ
رتن ۄِگاڑِ ۄِگوۓ کُتیِ مُئِیا سار ن کائیِ 
پوچھ تاچھ ۔ رتن۔ قیمتی ۔وگاڑ۔ خراب ۔ ذلیل وخوآر۔ وگوئے ۔
مغل فوجیوں جیسے کتے نے بے گناہ لوگوں کی جیول جیسی لاشوں کو اتنا مسخ کردیا ہے کہ کوئی بھی مردے کی شناخت یا دیکھ بھال نہیں کرسکتا

 ਆਪੇ ਜੋੜਿ ਵਿਛੋੜੇ ਆਪੇ ਵੇਖੁ ਤੇਰੀ ਵਡਿਆਈ ॥੨॥
aapay jorh vichhorhay aapay vaykh tayree vadi-aa-ee. ||2||
O’ God, on Your own, You unite and separate Your beings. I see in this also a sign of Your greatness. ||2||
ਤੂੰ ਆਪ ਹੀ (ਸੰਬੰਧਜੋੜ ਕੇ ਆਪ ਹੀ ਇਹਨਾਂ ਨੂੰ ਮੌਤ ਦੇ ਘਾਟ ਉਤਾਰ ਕੇ ਆਪੋ ਵਿਚੋਂਵਿਛੋੜ ਦਿੱਤਾ ਹੈ ਵੇਖਹੇ ਕਰਤਾਰਇਹ ਤੇਰੀ ਤਾਕਤ ਦਾ ਕਰਿਸ਼ਮਾ ਹੈ 
 آپے جوڑِ ۄِچھوڑے آپے ۄیکھُ تیریِ ۄڈِیائیِ 
برباد کیے ۔ کتیں۔ کتوں نے سار ۔ خیر گیری ۔چھوڑے ۔ جدا کئے ۔ وڈیائی ۔ عطمت۔(2)
اے خدا ، خود ہی ، آپ متحد ہو کر اپنے مخلوقات کو الگ کردیں۔ میں اس میں بھی آپ کی عظمت کی علامت دیکھتا ہوں۔

 ਜੇ ਕੋ ਨਾਉ ਧਰਾਏ ਵਡਾ ਸਾਦ ਕਰੇ ਮਨਿ ਭਾਣੇ ॥
jay ko naa-o Dharaa-ay vadaa saad karay man bhaanay.
Even if one assumes a great Name and revel in worldly pleasures,
ਜੇ ਕੋਈ ਮਨੁੱਖ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਵੱਡਾ ਅਖਵਾ ਲਏਤੇ ਮਨਮੰਨੀਆਂ ਰੰਗਰਲੀਆਂ ਮਾਣੇ,
جے کو ناءُ دھراۓ ۄڈا ساد کرے منِ بھانھے 
ساد۔ لطف مزہ۔ خصمے ندری۔ خدا کی نظر میں۔
یہاں تک کہ اگر کوئی ایک بہت بڑا نام مان لے اور دنیاوی خوشیوں میں مگن ہو ،

 ਖਸਮੈ ਨਦਰੀ ਕੀੜਾ ਆਵੈ ਜੇਤੇ ਚੁਗੈ ਦਾਣੇ ॥
khasmai nadree keerhaa aavai jaytay chugai daanay.
but for the Master-God, he is still a lowly worm.
ਤਾਂ ਭੀ ਉਹ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਦੀਆਂ ਨਜ਼ਰਾਂ ਵਿਚ ਇਕ ਕੀੜਾ ਹੀ ਦਿੱਸਦਾ ਹੈ ਜੋ (ਧਰਤੀ ਤੋਂਦਾਣੇ ਚੁਗ ਚੁਗ ਕੇ ਨਿਰਬਾਹ ਕਰਦਾ ਹੈ
کھسمےَ ندریِ کیِڑا آۄےَ جیتے چُگےَ دانھے 
جیتے ۔ جتنے ۔ مرمر جیوے ۔
لیکن مالک خدا کے لئے ، وہ اب بھی ایک کم کیڑا ہے۔

 ਮਰਿ ਮਰਿ ਜੀਵੈ ਤਾ ਕਿਛੁ ਪਾਏ ਨਾਨਕ ਨਾਮੁ ਵਖਾਣੇ ॥੩॥੫॥੩੯॥
mar mar jeevai taa kichh paa-ay naanak naam vakhaanay. ||3||5||39||
O’ Nanak, the one who eradicates his ego as if he is dead even when alive; he achieves the purpose of human life by meditating on Naam .||3||5||39||
ਹੇ ਨਾਨਕਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਵਿਕਾਰਾਂ ਵਲੋਂ ਆਪਾ ਮਾਰ ਕੇ (ਆਤਮਕ ਜੀਵਨਜੀਊਂਦਾ ਹੈਤੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਦਾ ਹੈ ਉਹੀ ਇਥੋਂ ਕੁਝ ਖੱਟਦਾ ਹੈ ੩੯
 مرِ مرِ جیِۄےَ تا کِچھُ پاۓ نانک نامُ ۄکھانھ
برائیاں چھوڑ کر۔ اخلاقی و روحانی ندگی بنانا۔ تارکچھ پائے ۔ تب ہی کچھ حاصل ہوتا ہے ۔ دکھانے بیان کرنا
مرمر جیوے ۔ جو ندگی مقصد چھوڑ کر۔ روحانی واخلاقی زندگی ہے جیئے
اےنانک ، وہ جو اپنے انا کو مٹا دیتا ہے گویا وہ زندہ رہتے ہوئے بھی مر گیا ہے۔ وہ نام پر دھیان دیکر انسانی زندگی کا مقصد حاصل کرتا ہے۔

 ਰਾਗੁ ਆਸਾ ਘਰੁ ੨ ਮਹਲਾ ੩ 
raag aasaa ghar 2 mehlaa 3
Raag Aasaa, second beat, Third Guru:
 ੴ ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ॥
ik-oNkaar satgur parsaad.
One Eternal God. Realized only by the grace of the True Guru:
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
ایک اونکار ستگر پرساد
ایک ابدی خداجو حقیقی گرو کے فضل سے محسوس ہوا

 ਹਰਿ ਦਰਸਨੁ ਪਾਵੈ ਵਡਭਾਗਿ ॥
har darsan paavai vadbhaag.
It is only by great good fortune that a person receives the Guru’s teachings to unite with God.
ਮਨੁੱਖ ਵੱਡੀ ਕਿਸਮਤਿ ਨਾਲ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਮਿਲਾਪ ਕਰਾਣ ਵਾਲਾ ਗੁਰ– ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰਦਾ ਹੈ
 ہرِ درسنُ پاۄےَ ۄڈبھاگِ 
کھٹ درسن۔ چھ شاشتر۔ ہر درسن۔ الہٰی دیدار۔ وڈے بھاگ۔ بلند قسمت۔
یہ خوش قسمتی سے ہی ایک شخص کو خدا کے ساتھ اتحاد کرنے کے لئے گرو کی تعلیمات ملتی ہیں۔

 ਗੁਰ ਕੈ ਸਬਦਿ ਸਚੈ ਬੈਰਾਗਿ ॥
gur kai sabad sachai bairaag.
It is attained by following the Guru’s teachings and feeling the pain of separation from God.
ਇਸ ਦੀ ਪ੍ਰਾਪਤੀ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਵਿਚ ਜੁੜ ਕੇਪਰਮਾਤਮਾ ਵਿਚ ਲਗਨ ਜੋੜ ਕੇ (ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਵੈਰਾਗ ਦੀ ਰਾਹੀਂਹੁੰਦੀ ਹੈ
گُر کےَ سبدِ سچےَ بیَراگِ 
ساچے ویراگ۔ سچے پیار۔
یہ گورو کی تعلیمات پر عمل کرنے اور خدا سے جدائی کے درد کو محسوس کرنے سے حاصل ہوا ہے۔

 ਖਟੁ ਦਰਸਨੁ ਵਰਤੈ ਵਰਤਾਰਾ ॥
khat darsan vartai vartaaraa.
Even though the six shastra are being propagated in the world
(ਜਗਤ ਵਿਚ ਵੇਦਾਂਤ ਆਦਿਕਛੇ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰਾਂ (ਦੀ ਵਿਕਾਰਦਾ ਰਿਵਾਜ ਚੱਲ ਰਿਹਾ ਹੈ,
 کھٹُ درسنُ ۄرتےَ ۄرتارا 
اگم۔ انسان رسائی سے اوپر اپار۔ لامحدود ۔ گر ۔ مرشد ۔ درسن۔ دیدار ۔
اگرچہ دنیا میں چھ شاسترا. کی تشہیر کی جارہی ہے