Urdu-Page-357

ਆਸ ਪਿਆਸੀ ਸੇਜੈ ਆਵਾ ॥
aas pi-aasee sayjai aavaa.
I start meditating on God’s Name with the yearning for union with Him,
ਆਪਣੇ ਪਤੀ ਨੂੰ ਮਿਲਣ ਦੀ ਇੱਛਾ ਅਤੇ ਤਰੇਹ ਨਾਲ ਮੈਂ ਉਸ ਦੇ ਪਲੰਘ ਤੇ ਜਾਂਦੀ ਹਾਂ;
 آس پِیاسیِ سیجےَ آۄا 
میں خدا کے نام پر غور کرنا شروع کرتا ہوں اس کے ساتھ اتحاد کی تڑپ کے ساتھ ،

 ਆਗੈ ਸਹ ਭਾਵਾ ਕਿ ਨ ਭਾਵਾ ॥੨॥
aagai sah bhaavaa ke na bhaavaa. ||2||
but I do not know whether my Husband-God will be pleased with me or not. |2|
ਪਰੰਤੂ ਅੱਗੇ ਮੈਨੂੰ ਪਤਾ ਨਹੀਂ ਕਿ ਮੈਂ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਪਸੰਦ ਆਵਾਂ ਕਿ ਨਾਹ 
 آگےَ سہ بھاۄا کِ ن بھاۄا 
لیکن مجھے نہیں معلوم کہ میرا شوہر خدا مجھ سے راضی ہوگا یا نہیں۔

 ਕਿਆ ਜਾਨਾ ਕਿਆ ਹੋਇਗਾ ਰੀ ਮਾਈ ॥
ki-aa jaanaa ki-aa ho-igaa ree maa-ee.
O’ my mother, I don’t know what would happen to me,
ਹੇ ਮਾਂਮੈਨੂੰ ਸਮਝ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦੀ ਕਿ ਮੇਰਾ ਕੀਹ ਬਣੇਗਾ,
 کِیا جانا کِیا ہوئِگا ریِ مائیِ 
اےمیری ماں ، مجھے نہیں معلوم کہ میرے ساتھ کیا ہوگا ،

 ਹਰਿ ਦਰਸਨ ਬਿਨੁ ਰਹਨੁ ਨ ਜਾਈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
har darsan bin rahan na jaa-ee. ||1|| rahaa-o.
but I can’t survive spiritually without the blessed vision of God. ||1||Pause||
ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦੇ ਦੀਦਾਰ ਦੇ ਬਗੈਰ ਮੈਂ ਰਹਿ ਨਹੀਂ ਸਕਦੀ  ਰਹਾਉ 
 ہرِ درسن بِنُ رہنُ ن جائیِ  رہاءُ 
لیکن میں خدا کے مبارک نظارے کے بغیر روحانی طور پر زندہ نہیں رہ سکتا۔

 ਪ੍ਰੇਮੁ ਨ ਚਾਖਿਆ ਮੇਰੀ ਤਿਸ ਨ ਬੁਝਾਨੀ ॥
paraym na chaakhi-aa mayree tis na bujhaanee.
I have not enjoyed His love, therefore, my yearning for Maya is not quenched.
ਮੈਂ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦਾ ਪ੍ਰੇਮ ਨਹੀਂ ਮਣਿਆਇਸੇ ਕਰਕੇ ਮੇਰੀ ਮਾਇਆ ਵਾਲੀ ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਦੀ ਅੱਗ ਨਹੀਂ ਬੁੱਝ ਸਕੀ
 پ٘ریمُ ن چاکھِیا میریِ تِس ن بُجھانیِ 
میں نے اس کی محبت سے لطف اندوز نہیں ہوا ، لہذا ، مایا کے لئے میری تڑپ ختم نہیں ہوئی ہے۔

 ਗਇਆ ਸੁ ਜੋਬਨੁ ਧਨ ਪਛੁਤਾਨੀ ॥੩॥
ga-i-aa so joban Dhan pachhutaanee. ||3||
My youth is gone and now I, the soul-bride, is repenting. ||3||
ਮੇਰੀ ਜਵਾਨੀ ਲੰਘ ਗਈ ਹੈਹੁਣ ਮੇਰੀ ਜਿੰਦ ਪਛਤਾਵਾ ਕਰ ਰਹੀ ਹੈ 
 گئِیا سُ جوبنُ دھن پچھُتانیِ 
میری جوانی ختم ہوگئی ہے اور اب میں ، روح کی دلہن ، توبہ کر رہا ہوں۔

 ਅਜੈ ਸੁ ਜਾਗਉ ਆਸ ਪਿਆਸੀ ॥
ajai so jaaga-o aas pi-aasee.
Yearning for union with Him I am still awake,
ਹੁਣ ਭੀ ਮੈਂ ਪਰਮ ਚਾਹਵਾਨ ਹੋ ਜਾਗਦੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹਾਂ 
اجےَ سُ جاگءُ آس پِیاسیِ 
اس کے ساتھ اتحاد کی تڑپ میں ابھی بھی جاگ رہا ہوں ،

 ਭਈਲੇ ਉਦਾਸੀ ਰਹਉ ਨਿਰਾਸੀ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
bha-eelay udaasee raha-o niraasee. ||1|| rahaa-o.
and bereft of hope I remain depressed. ||1||Pause||
ਮੈਂ ਗ਼ਮਗੀਨ ਹੋ ਗਈ ਹਾਂ ਅਤੇ ਬੇਉਮੈਦ ਰਹਿੰਦੀ ਹਾਂ
بھئیِلے اُداسیِ رہءُ نِراسیِ  رہاءُ 
اور امید کا دامن میں افسردہ رہتا ہوں۔

 ਹਉਮੈ ਖੋਇ ਕਰੇ ਸੀਗਾਰੁ ॥
ha-umai kho-ay karay seegaar.
If soul-bride overcomes her egotism and adorns herself with the virtues of meditation,
ਜੇਕਰ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਹਉਮੈ ਛੱਡ ਦੇਵੇ ਅਤੇ ਆਤਮਾ ਨੂੰ ਸੁੰਦਰ ਬਨਾਣ ਵਾਲਾ ਹਾਰ ਸ਼ਿੰਗਾਰ ਕਰੇ,
ہئُمےَ کھوءِ کرے سیِگارُ 
اگر روح دلہن اس کی غرور پر قابو پالتی ہے اور اپنے آپ کو مراقبہ کی خوبیوں سے آراستہ کرتی ہے ،

 ਤਉ ਕਾਮਣਿ ਸੇਜੈ ਰਵੈ ਭਤਾਰੁ ॥੪॥
ta-o kaaman sayjai ravai bhataar. ||4||
then the she would realize Husband-God in her heart and would enjoy Him. ||4||
ਤਦੋਂ ਉਸ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਨੂੰ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਉਸ ਦੀ ਹਿਰਦਾਸੇਜ ਤੇ  ਕੇ ਮਿਲਦਾ ਹੈ 
تءُ کامنھِ سیجےَ رۄےَ بھتارُ 
تب وہ اپنے دل میں شوہر خدا کو محسوس کرے گی اور اس سے لطف اٹھائے گی۔

 ਤਉ ਨਾਨਕ ਕੰਤੈ ਮਨਿ ਭਾਵੈ ॥
ta-o naanak kantai man bhaavai.
O’ Nanak, only then the soul-bride becomes pleasing to the Husband-God;
ਹੇ ਨਾਨਕਤਦੋਂ ਹੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਚੰਗੀ ਲੱਗਦੀ ਹੈ,
تءُ نانک کنّتےَ منِ بھاۄےَ 
اے نانک ، تب ہی روح دلہن شوہر خدا کو راضی کرتی ہے۔

 ਛੋਡਿ ਵਡਾਈ ਅਪਣੇ ਖਸਮ ਸਮਾਵੈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥੨੬॥
chhod vadaa-ee apnay khasam samaavai. ||1|| rahaa-o. ||26||
when shedding egotism, she merges in her Master-God. ||1||Pause||26||
ਜਦੋਂ ਮਾਣਵਡਿਆਈ ਛੱਡ ਕੇ ਆਪਣੇ ਖਸਮ ਵਿਚ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ  ਰਹਾਉ ੨੬
 چھوڈِ ۄڈائیِ اپنھے کھسم سماۄےَ
جب غرور ختم کرتے ہیں تو ، وہ اپنے آقا – خدا میں ضم ہوجاتی ہیں۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ॥
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
 ਪੇਵਕੜੈ ਧਨ ਖਰੀ ਇਆਣੀ ॥
payvkarhai Dhan kharee i-aanee.
I, the bride-soul remained ignorant in my parent’s house (this world),
ਪੇਕੇ ਘਰ (ਇਸ ਜਹਾਨਅੰਦਰਮੈਂ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਬਹੁਤ ਬੇਸਮਝ ਰਹੀ,
 پیۄکڑےَ دھن کھریِ اِیانھیِ 
پیوکڑے ۔ اپنے مان باپ کے گھر پیکے ۔ دھن۔ عورت کھری ۔
دلہن کی روح میرے والدین کے گھر میں جاہل رہی ،

 ਤਿਸੁ ਸਹ ਕੀ ਮੈ ਸਾਰ ਨ ਜਾਣੀ ॥੧॥
tis sah kee mai saar na jaanee. ||1||
and did not realize the worth of my Husband-God. ||1||
ਅਤੇ ਉਸ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਕਦਰ ਨਹੀਂ ਸਮਝ ਸਕੀ 
 تِسُ سہ کیِ مےَ سار ن جانھیِ 
نہایت یادہ۔ ایانی ۔ انجان۔ نا سجھ ۔ سیہہ۔ خاوند۔ خدا۔ سار۔ عظمت۔ حقیقت قدرومنزلت
اور مجھے اپنے شوہر خدا کی قدر کا احساس نہیں ہوا۔

 ਸਹੁ ਮੇਰਾ ਏਕੁ ਦੂਜਾ ਨਹੀ ਕੋਈ ॥
saho mayraa ayk doojaa nahee ko-ee.
My Husband-God is the only one and there is no other like Him.
ਮੇਰਾ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਹਰ ਵੇਲੇ ਇਕਰਸ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈਉਸ ਵਰਗਾ ਹੋਰ ਕੋਈ ਨਹੀਂ ਹੈ
سہُ میرا ایکُ دوُجا نہیِ کوئیِ 
 (1)ایک واحد ۔ ندر ۔
میرا شوہر خدا صرف ایک ہی ہے اور اس جیسا کوئی دوسرا نہیں ہے۔

 ਨਦਰਿ ਕਰੇ ਮੇਲਾਵਾ ਹੋਈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
nadar karay maylaavaa ho-ee. ||1|| rahaa-o.
My union with Him can take place only with His glance of grace. ||1||Pause||
ਉਸ ਦੀ ਮੇਹਰ ਦੀ ਨਜ਼ਰ ਨਾਲ ਹੀ ਮੇਰਾ ਉਸ ਨਾਲ ਮਿਲਾਪ ਹੋ ਸਕਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
ندرِ کرے میلاۄا ہوئیِ  رہاءُ 
نگاہ شفقت۔ میلاوا۔ ملاپ کرنے والا ( 1) رہاؤ
اس کے ساتھ میرا اتحاد صرف اس کے فضل وکرم سے ہوسکتا ہے۔

 ਸਾਹੁਰੜੈ ਧਨ ਸਾਚੁ ਪਛਾਣਿਆ ॥
saahurrhai Dhan saach pachhaani-aa.
The bride soul who recognizes the truth about the father-in-law’s house (the next world),
ਜੇਹੜੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਸਹੁਰੇ ਘਰ (ਅਗਲੇ ਜਹਾਨਦੀ ਅਸਲੀਅਤ ਨੂੰ ਪਛਾਣ ਲੈਂਦੀ ਹੈ;
ساہُرڑےَ دھن ساچُ پچھانھِیا 
ساہر ڑے ۔ سسر گھر ملک عدم۔ ساچ۔ حقیقت ۔
دلہن کی روح جو سسر کے گھر (اگلی دنیا) کے بارے میں حقیقت کو پہچانتی ہے ،

 ਸਹਜਿ ਸੁਭਾਇ ਅਪਣਾ ਪਿਰੁ ਜਾਣਿਆ ॥੨॥
sahj subhaa-ay apnaa pir jaani-aa. ||2||
intuitively realizes her Husband-God. ||2||
ਅਡੋਲ ਹੀ ਉਹ ਆਪਣੇ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਡੂੰਘੀ ਸਾਂਝ ਪਾ ਲੈਂਦੀ ਹੈ  
سہجِ سُبھاءِ اپنھا پِرُ جانھِیا 
سہج سبھائے ۔ قدرتی ور پر۔ اپنا پر۔ اپنے اقا۔ خاوند جانیا۔
بدیہی طور پر اسے اپنے شوہر خدا کا احساس ہوتا ہے۔

 ਗੁਰ ਪਰਸਾਦੀ ਐਸੀ ਮਤਿ ਆਵੈ ॥
gur parsaadee aisee mat aavai.
When through Guru’s grace the bride-soul obtains such wisdom,
ਜਦੋਂ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ (ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਨੂੰਅਜੇਹੀ ਅਕਲ  ਜਾਂਦੀ ਹੈ
 گُر پرسادیِ ایَسیِ متِ آۄےَ 
سمجھ ۔ گر پرسادی۔ رحمت مرشد سے ۔ مت۔ عقل۔
جب گرو کے فضل سے دلہن کی روح ایسی حکمت حاصل کرتی ہے ،

 ਤਾਂ ਕਾਮਣਿ ਕੰਤੈ ਮਨਿ ਭਾਵੈ ॥੩॥
taaN kaaman kantai man bhaavai. ||3||
then the soul-bride becomes pleasing to her Husband-God. ||3||
ਤਦੋਂ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਕੰਤਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਚੰਗੀ ਲੱਗਣ ਲੱਗ ਪੈਂਦੀ ਹੈ 
تاں کامنھِ کنّتےَ منِ بھاۄےَ 
تاں کامن۔ اس کا دل ۔ کنتے ۔ خاوند۔ من۔ بھاوے ۔ اچھا لگے (2)
پھر روح دلہن اپنے شوہر خدا کو راضی کرتی ہے۔

 ਕਹਤੁ ਨਾਨਕੁ ਭੈ ਭਾਵ ਕਾ ਕਰੇ ਸੀਗਾਰੁ ॥
kahat naanak bhai bhaav kaa karay seegaar.
Nanak says, she who adorns herself with the revered fear of God,
ਨਾਨਕ ਆਖਦਾ ਹੈ– ਜੇਹੜੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਡਰ ਦਾ ਤੇ ਪ੍ਰੇਮ ਦਾ ਸਿੰਗਾਰ ਬਣਾਂਦੀ ਹੈ,
کہتُ نانکُ بھےَ بھاۄ کا کرے سیِگارُ 
کہت نانک۔ نانک کا ہے فرمان ۔ بھاو۔ پیار۔ سیگار ۔
نانک کہتے ہیں ، وہ جو خود کو خدا کے خوف سے آراستہ کرتی ہے ،

 ਸਦ ਹੀ ਸੇਜੈ ਰਵੈ ਭਤਾਰੁ ॥੪॥੨੭॥
sad hee sayjai ravai bhataar. ||4||27||
enjoys her Husband-God forever in her heart ||4||27||
ਉਹ ਆਪਣੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਸਦਾ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇਸੇਜ ਉਤੇ ਮਾਣਦੀ ਹੈ
سد ہیِ سیجےَ رۄےَ بھتار
سجاوٹ سدہی۔ ہمیشہ ۔ سچے ۔ سیج پر ۔ یعنی دل میں روتے بھتار۔ خدا دل میں بستا ہے ۔
اس کے دل میں ہمیشہ کے لئے اس کے شوہر – خدا سے لطف اٹھاتا ہے

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ॥
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
 ਨ ਕਿਸ ਕਾ ਪੂਤੁ ਨ ਕਿਸ ਕੀ ਮਾਈ ॥
 na kis kaa poot na kis kee maa-ee.
In reality, no one is anybody’s son and no one is anyone’s mother forever.
ਅਸਲ ਵਿਚ ਨਾਹ ਮਾਂ ਨਾਹ ਪੁੱਤਰ ਕੋਈ ਭੀ ਕਿਸੇ ਦਾ ਪੱਕਾ ਸਾਥੀ ਨਹੀਂ ਹੈ
ن کِس کا پوُتُ ن کِس کیِ مائیِ 
موہ۔ محبت ۔
حقیقت میں کوئی بھی کسی کا بیٹا نہیں ہے اور ہمیشہ کے لئے کسی کی ماں نہیں ہے۔

 ਝੂਠੈ ਮੋਹਿ ਭਰਮਿ ਭੁਲਾਈ ॥੧॥
jhoothai mohi bharam bhulaa-ee. ||1||
Misled by doubt, the entire world is entangled in false worldly attachment. ||1||
ਝੂਠੇ ਮੋਹ ਦੇ ਕਾਰਨ ਦੁਨੀਆ ਭਟਕਣਾ ਵਿਚ ਪੈ ਕੇ ਕੁਰਾਹੇ ਪਈ ਹੋਈ ਹੈ 
جھوُٹھےَ موہِ بھرمِ بھُلائیِ 
بھرم۔ بھٹکن ۔ شک و شہبات
شکوک و شبہات سے دوچار ، پوری دنیا غلط دنیاوی لگاؤ میں الجھی ہوئی ہے۔

 ਮੇਰੇ ਸਾਹਿਬ ਹਉ ਕੀਤਾ ਤੇਰਾ ॥
mayray saahib ha-o keetaa tayraa.
O My Master-God, I am created by You.
ਹੇ ਮੇਰੇ ਮਾਲਿਕਪ੍ਰਭੂਮੈਂ ਤੇਰਾ ਪੈਦਾ ਕੀਤਾ ਹੋਇਆ ਹਾਂ
میرے ساہِب ہءُ کیِتا تیرا 
صاحب۔ آقا کیتا۔ تیرا۔ تیرا پیدا کیا ہوا۔
اے میرے آقا – خدا ، میں آپ کے ذریعہ پیدا کیا گیا ہوں۔

 ਜਾਂ ਤੂੰ ਦੇਹਿ ਜਪੀ ਨਾਉ ਤੇਰਾ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
jaaN tooN deh japee naa-o tayraa. ||1|| rahaa-o.
When You bless me with Naam, only then I will be able to meditate. |1|Pause|
ਜਦੋਂ ਤੂੰ ਮੈਨੂੰ ਆਪਣਾ ਨਾਮ ਦੇਂਦਾ ਹੈਂਤਦੋਂ ਹੀ ਮੈਂ ਜਪ ਸਕਦਾ ਹਾਂ  ਰਹਾਉ 
جاں توُنّ دیہِ جپیِ ناءُ تیرا  رہاءُ 
چپی ناؤں ۔ نام یاد کرتا 
جب آپ مجھے نعمت سے نوازیں گے تب ہی میں غور کرنے کے قابل ہوجاؤں گا۔ 

 ਬਹੁਤੇ ਅਉਗਣ ਕੂਕੈ ਕੋਈ ॥
bahutay a-ugan kookai ko-ee.
Even if a person is full of sins and even then if he sincerely prays to God.
ਅਨੇਕਾਂ ਹੀ ਪਾਪ ਕੀਤੇ ਹੋਏ ਹੋਣਫਿਰ ਭੀ ਜੇ ਕੋਈ ਮਨੁੱਖ (ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਦਰ ਤੇਅਰਜ਼ੋਈ ਕਰੇ,
بہُتے ائُگنھ کوُکےَ کوئیِ 
ہوں (1) رہاؤ۔ کیتا تیرا ۔
یہاں تک کہ اگر کوئی شخص گناہوں سے بھرا ہوا ہے اور تب بھی اگر وہ خلوص دل سے خدا سے دعا کرتا ہے۔

 ਜਾ ਤਿਸੁ ਭਾਵੈ ਬਖਸੇ ਸੋਈ ॥੨॥
jaa tis bhaavai bakhsay so-ee. ||2||
God would forgive that person, if it pleases Him. ||2||
ਪਰਮਾਤਮਾ ਉਸ ਨੂੰ ਮਾਫ ਕਰੇਗਾਜੇਕਰ ਉਸ ਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗੇਗਾ 
 جا تِسُ بھاۄےَ بکھسے سوئیِ 
تیرا پیدا کیا ہوا ہوں۔
خدا اس شخص کو بخش دیتا ، اگر وہ اسے راضی کرے۔

 ਗੁਰ ਪਰਸਾਦੀ ਦੁਰਮਤਿ ਖੋਈ ॥
gur parsaadee durmat kho-ee.
Through the Guru’s grace, I have lost all my evil intellect,
ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਸਾਡੀ ਖੋਟੀ ਮਤਿ ਨਾਸ ਹੁੰਦੀ ਹੈ
 گُر پرسادیِ دُرمتِ کھوئیِ 
درمت ۔ بد عقلی ۔ کھوئی مٹائی ۔
گرو کے فضل سے ، میں نے اپنی تمام بری عقل کھو دی ہے ،

 ਜਹ ਦੇਖਾ ਤਹ ਏਕੋ ਸੋਈ ॥੩॥
jah daykhaa tah ayko so-ee. ||3||
and now wherever I look, there I see the One God. ||3||
ਮੈਂ ਜਿਧਰ ਵੇਖਦਾ ਹਾਂ ਉਧਰ (ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਪੈਦਾ ਕਰਨ ਵਾਲਾਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਹੀ ਵਿਆਪਕ ਵੇਖਦਾ ਹਾਂ 
 جہ دیکھا تہ ایکو سوئیِ 
ناں ۔تب ۔
اور اب جہاں بھی میں دیکھتا ہوں ، وہاں میں ایک ہی خدا کو دیکھتا ہوں۔

 ਕਹਤ ਨਾਨਕ ਐਸੀ ਮਤਿ ਆਵੈ ॥
kahat naanak aisee mat aavai.
Nanak says, if one comes to such an understanding,
ਨਾਨਕ ਆਖਦਾ ਹੈ– ਜਦੋਂ ਜੀਵ ਨੂੰ ਅਜੇਹੀ ਅਕਲ  ਜਾਵੇ,
 کہت نانک ایَسیِ متِ آۄےَ 
سچے سچ سماوے ۔
نانک کہتے ہیں ، اگر کوئی ایسی سمجھ میں آجاتا ہے ،

 ਤਾਂ ਕੋ ਸਚੇ ਸਚਿ ਸਮਾਵੈ ॥੪॥੨੮॥
taaN ko sachay sach samaavai. ||4||28||
only then one merges in the eternal God ||4||28||
ਤਾਂ ਜੀਵ ਸਦਾ ਉਸ ਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਯਾਦ ਵਿਚ ਲੀਨ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ੨੮
 تاں کو سچے سچِ سماۄےَ
سچے سچ میں مجذوب ہوتا ہے ۔
تب ہی ایک ابدی خدا میں ضم ہوجاتا ہے

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ਦੁਪਦੇ ॥
aasaa mehlaa 1 dupday.
Raag Aasaa, Du-Padas (two liners), First Guru:
 ਤਿਤੁ ਸਰਵਰੜੈ ਭਈਲੇ ਨਿਵਾਸਾ ਪਾਣੀ ਪਾਵਕੁ ਤਿਨਹਿ ਕੀਆ ॥
tit saravrarhai bha-eelay nivaasaa paanee paavak tineh kee-aa.
We dwell in such an ocean in which God has put the fire of worldly desires of vices instead of water.
ਸਾਡੀ ਉਸ ਭਿਆਨਕ ਸਰੋਵਰ ਵਿਚ ਵੱਸੋਂ ਹੈ ਜਿਸ ਵਿਚ ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪ ਹੀ ਪਾਣੀ ਦੇ ਥਾਂ ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਦੀ ਅੱਗ ਪੈਦਾ ਕੀਤੀ ਹੈ,
تِتُ سرۄرڑےَ بھئیِلے نِۄاسا پانھیِ پاۄکُ تِنہِ کیِیا 
تت۔ اس ۔ سرورڑے ۔ سمندر ۔بھیئی۔نواسا۔ اس میں سکون پذیر ہے ۔ بستا ہے ۔
ہم ایسے بحر میں بستے ہیں جس میں خدا نے پانی کی بجائے دنیاوی خواہشات کی آگ کو آگ لگا دی ہے۔

 ਪੰਕਜੁ ਮੋਹ ਪਗੁ ਨਹੀ ਚਾਲੈ ਹਮ ਦੇਖਾ ਤਹ ਡੂਬੀਅਲੇ ॥੧॥
pankaj moh pag nahee chaalai ham daykhaa tah doobee-alay. ||1||
Stuck in the mud of false worldly attachments, people cannot move towards spiritual advancement. I see many people being drowned in this ocean.||1||
ਮੋਹ ਦੇ ਚਿੱਕੜ ਵਿਚ ਫਸੇ ਪਏ ਜੀਵਾਂ ਦਾ ਪੈਰ ਚਲ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਉਸ ਅੰਦਰ ਡੁਬਦਿਆਂ ਮੈਂ ਵੇਖ ਲਿਆ ਹੈ 
پنّکجُ موہ پگُ نہیِ چالےَ ہم دیکھا تہ ڈوُبیِئلے 
پانی پاوک تنیہہ کیا۔ جن میں پانی کی بجائے آگ سے بھرا ہے ۔ پنکج ۔ کیچڑ۔ پک۔ پاؤں ہم دیکھا۔ ہم نے دیکھا ہے ۔ تیہہ ڈوبیلے ۔ اس میں ڈوبتے ہوئے
جھوٹی دنیاوی لگاؤوں کی کیچڑ میں پھنس کر ، لوگ روحانی ترقی کی طرف نہیں بڑھ سکتے۔ میں دیکھتا ہوں کہ بہت سارے لوگ اس سمندر میں ڈوبے ہوئے ہیں۔

 ਮਨ ਏਕੁ ਨ ਚੇਤਸਿ ਮੂੜ ਮਨਾ ॥
man ayk na chaytas moorh manaa.
O’ my foolish mind, why don’t you remember God?
ਹੇ ਮੂਰਖ ਮਨਤੂੰ ਕਿਉਂ ਇਕ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਯਾਦ ਨਹੀਂ ਕਰਦਾ
من ایکُ ن چیتسِ موُڑ منا 
 (1) چیتس۔ یاد ۔ موڑھ۔ مورکھ۔ جاہل
اے ’میرے بے وقوف دماغ ، تم خدا کو کیوں یاد نہیں کرتے ہو؟

 ਹਰਿ ਬਿਸਰਤ ਤੇਰੇ ਗੁਣ ਗਲਿਆ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
har bisrat tayray gun gali-aa. ||1|| rahaa-o.
By forgetting God, all your virtues are eroding away. ||1||Pause||
ਤੂੰ ਜਿਉਂ ਜਿਉਂ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਵਿਸਾਰਦਾ ਹੈਂਤੇਰੇ (ਅੰਦਰੋਂਗੁਣ ਘਟਦੇ ਜਾ ਰਹੇ ਹਨ  ਰਹਾਉ 
ہرِ بِسرت تیرے گُنھ گلِیا  رہاءُ 
۔ ہر وسرت خدا کو بھلا کر گن گلیاں۔
خدا کو بھلا کر ، آپ کی ساری خوبیاں مٹا رہی ہیں۔

 ਨਾ ਹਉ ਜਤੀ ਸਤੀ ਨਹੀ ਪੜਿਆ ਮੂਰਖ ਮੁਗਧਾ ਜਨਮੁ ਭਇਆ ॥
naa ha-o jatee satee nahee parhi-aa moorakh mugDhaa janam bha-i-aa.
O’ God, neither am I a celibate, nor compassionate, nor a scholar. In fact, throughout my entire life I have been a pure ignorant fool.
 ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਨਾਹ ਮੈਂ ਜਤੀ ਹਾਂ ਨਾਹ ਮੈਂ ਸਤੀ ਹਾਂ ਨਾਹ ਹੀ ਮੈਂ ਪੜ੍ਹਿਆ ਹੋਇਆ ਹਾਂਮੇਰਾ ਜੀਵਨ ਤਾਂ ਮੂਰਖਾਂ ਬੇਸਮਝਾਂ ਵਾਲਾ ਬਣਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ,
نا ہءُ جتیِ ستیِ نہیِ پڑِیا موُرکھ مُگدھا جنمُ بھئِیا 
تیرے اوصاف منہدم ہو رہے ہیں۔ مٹ رہے ہیں (1) رہاؤ۔ جتی شہوت پر ضبط رکھنے والا ستی ۔
اے خدا ، نہ تو میں برہمی ہوں ، نہ ہی ہمدرد ، اور نہ ہی کوئی عالم۔ در حقیقت ، پوری زندگی میں میں خالص جاہل بیوقوف رہا ہوں۔

 ਪ੍ਰਣਵਤਿ ਨਾਨਕ ਤਿਨ੍ਹ੍ਹ ਕੀ ਸਰਣਾ ਜਿਨ੍ਹ੍ਹ ਤੂੰ ਨਾਹੀ ਵੀਸਰਿਆ ॥੨॥੨੯॥
paranvat naanak tinH kee sarnaa jinH tooN naahee veesri-aa. ||2||29||
O’ God keep me in the shelter of those who have not forgotten You, prays Nanak. ||2||29||
ਨਾਨਕ ਬੇਨਤੀ ਕਰਦਾ ਹੈਹੇ ਪ੍ਰਭੂਮੈਨੂੰ ਉਹਨਾਂ ਦੀ ਸਰਨ ਵਿਚ ਰੱਖ ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੂੰ ਤੂੰ ਨਹੀਂ ਭੁੱਲਿਆ ੨੯
 پ٘رنھۄتِ نانک تِن٘ہ٘ہ کیِ سرنھا جِن٘ہ٘ہ توُنّ ناہیِ ۄیِسرِیا
بااخلاق ۔ بلند اخلاق سچا ۔ مگدھا۔ جاہل۔ جنم بھیا۔ زندگی ہوئی ۔ جنم لینا بے فائدہ ہو گیا۔ پر نوت۔ عرض گذارتا ہے ۔
 اے خدا مجھے ان لوگوں کی پناہ میں رکھے جو آپ کو فراموش نہیں کرتے نانک کی دعا مانگتے ہیں۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ॥
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
 ਛਿਅ ਘਰ ਛਿਅ ਗੁਰ ਛਿਅ ਉਪਦੇਸ ॥
chhi-a ghar chhi-a gur chhi-a updays.
There are six systems of philosophy, six teachers and six doctrines.
ਛੇ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰ ਹਨਛੇ ਹੀ (ਇਹਨਾਂ ਸ਼ਾਸਤ੍ਰਾਂ ਦੇਚਲਾਣ ਵਾਲੇ ਹਨਛੇ ਹੀ ਇਹਨਾਂ ਦੇ ਸਿੱਧਾਂਤ ਹਨ
چھِء گھر چھِء گُر چھِء اُپدیس 
چھ گھر۔ چھ شاشتر۔ چھیئہ گر۔ شاشتروں کو تحریر کرنے والے مرشد چھ گر۔ چھ فلسفے ۔ سدھانت ۔ گرگر ایکو۔
فلسفہ کے چھ نظام ہیں ، چھ اساتذہ اور چھ عقائد۔

 ਗੁਰ ਗੁਰੁ ਏਕੋ ਵੇਸ ਅਨੇਕ ॥੧॥
gur gur ayko vays anayk. ||1||
But the teacher of all the teachers is the one God, though He is manifested in many ways. ||1||
ਪਰ ਇਹਨਾਂ ਸਾਰਿਆਂ ਦਾ ਮੂਲਗੁਰੂ (ਪਰਮਾਤਮਾਇੱਕ ਹੈ ਇਹ ਸਾਰੇ ਸਿੱਧਾਂਤ ਉਸ ਇੱਕ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਹੀ ਅਨੇਕਾਂ ਵੇਸ ਹਨ 
گُر گُرُ ایکو ۄیس انیک 
بھیس انیک۔ اس کے بھیس بیشمار ہیں (1
لیکن تمام اساتذہ کا استاد ایک ہی خدا ہے ، حالانکہ وہ کئی طریقوں سے ظاہر ہوتا ہے۔

 ਜੈ ਘਰਿ ਕਰਤੇ ਕੀਰਤਿ ਹੋਇ ॥
jai ghar kartay keerat ho-ay.
That congregation where the Praises of the Creator are sung,
ਜਿਸ ਮੱਤ ਵਿੱਚ ਅਕਾਲਪੁਰਖ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਹੁੰਦੀ ਹੈ,
جےَ گھرِ کرتے کیِرتِ ہوءِ 
) کرتے کرنے والے کرتار کارسا ۔خدا ۔ کیرت صفت صلاح۔
وہ جماعت جہاں خالق کی حمد گائی جاتی ہے 

 ਸੋ ਘਰੁ ਰਾਖੁ ਵਡਾਈ ਤੋਹਿ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
so ghar raakh vadaa-ee tohi. ||1|| rahaa-o.
follow that congregation; in it rests your glory. ||1||Pause||
ਉਸ ਮੱਤ ਦੀ ਪੈਰਵੀ ਕਰ ਇਸ ਵਿੱਚ ਤੇਰੀ ਵਡਿਆਈ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
سو گھرُ راکھُ ۄڈائیِ توہِ  رہاءُ 
سوگھر۔ اس گھر ۔ راکھ۔ سنبھال۔ خیبر گیری کر۔ وڈائی تو ہے ۔ تیری عظمت ہے (1) رہاؤ۔ وسوئے ۔
اس جماعت کی پیروی کرو۔ اس میں آپ کی شان ہے۔ 

 ਵਿਸੁਏ ਚਸਿਆ ਘੜੀਆ ਪਹਰਾ ਥਿਤੀ ਵਾਰੀ ਮਾਹੁ ਭਇਆ ॥
 visu-ay chasi-aa gharhee-aa pahraa thitee vaaree maahu bha-i-aa.
The seconds, minutes, hours, the solar and lunar days, months,
ਜਿਵੇਂ ਵਿਸੁਏਚਸੇਘੜੀਆਂਪਹਰਥਿੱਤਾਂਵਾਰਮਹੀਨਾ
ۄِسُۓ چسِیا گھڑیِیا پہرا تھِتیِ ۄاریِ ماہُ بھئِیا 
چسے ۔ ایک پل۔ 30 پل ایک گھڑی ۔ ساڑھے سات گھڑی ایک پل۔ 8 پہر۔ دن رات۔
سیکنڈ ، منٹ ، گھنٹے ، شمسی اور قمری دن ، مہینوں ، 

 ਸੂਰਜੁ ਏਕੋ ਰੁਤਿ ਅਨੇਕ ॥
 sooraj ayko rut anayk.
and the changing seasons, all originate from the same one Sun.
ਅਤੇ ਕਈ ਮੌਸਮ ਇਕੋ ਹੀ ਸੂਰਜ ਤੋਂ ਉਤਪੰਨ ਹੁੰਦੇ ਹਨ
سوُرجُ ایکو رُتِ انیک 
اوسا۔ ایک چسا۔ 30
اور بدلتے موسم ، سب ایک ہی سورج سے شروع ہوتے ہیں۔ 

 ਨਾਨਕ ਕਰਤੇ ਕੇ ਕੇਤੇ ਵੇਸ ॥੨॥੩੦॥
naanak kartay kay kaytay vays. ||2||30||
Similarly O’ Nanak, all these beings and creatures are the countless forms of the one Creator. ||2||30||
ਤਿਵੇਂ ਹੇ ਨਾਨਕਇਹ ਸਾਰੇ ਜੀਆ ਜੰਤ ਕਰਤਾਰ ਦੇ ਅਨੇਕਾਂ ਸਰੂਪ ਹਨ ੩੦
نانک کرتے کے کیتے ۄیس
مرشدوں کا مرشد ۔ایکو ۔واحد۔
اسی طرح اے نانک یہ سارے مخلوقات ایک خالق کی ان گنت شکلیں ہیں۔