Urdu-Page-356

ਆਪੁ ਬੀਚਾਰਿ ਮਾਰਿ ਮਨੁ ਦੇਖਿਆ ਤੁਮ ਸਾ ਮੀਤੁ ਨ ਅਵਰੁ ਕੋਈ ॥
aap beechaar maar man daykhi-aa tum saa meet na avar ko-ee.
O’ God, when with a disciplined mind (free of vices) I reflected upon myself, I realized that there is no better friend than You.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਜਦੋਂ ਮੈਂ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਸਵਾਰ ਕੇ ਆਪਣਾ ਮਨ ਮਾਰ ਕੇ ਵੇਖਿਆ ਤਾਂ ਮੈਨੂੰ ਦਿੱਸ ਪਿਆ ਕਿ ਤੇਰੇ ਵਰਗਾ ਮਿੱਤ੍ਰ ਹੋਰ ਕੋਈ ਨਹੀਂ ਹੈ
آپُ بیِچارِ مارِ منُ دیکھِیا تُم سا میِتُ ن اۄرُ کوئیِ 
خاوند کی ماتا مگر یہاں دنیاوی دولت سے مراد ہے ۔
جس نذر کرئے ۔
اے خدا جب ایک نظم و ضبط کے ساتھ میں نے اپنے آپ پر غور کیا ، تو میں نے محسوس کیا کہ آپ سے بہتر کوئی دوسرا دوست نہیں ہے۔

 ਜਿਉ ਤੂੰ ਰਾਖਹਿ ਤਿਵ ਹੀ ਰਹਣਾ ਦੁਖੁ ਸੁਖੁ ਦੇਵਹਿ ਕਰਹਿ ਸੋਈ ॥੩॥
ji-o tooN raakhahi tiv hee rahnaa dukh sukh dayveh karahi so-ee. ||3||
Howsoever You keep me I have to live accordingly. It is You who are the giver of pain or pleasure and whatever You do, comes to pass. ||3||
ਜਿਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਤੂੰ ਮੈਨੂੰ ਰੱਖਦਾ ਹੈਂਮੈਂ ਉਸੇ ਤਰ੍ਹਾਂ ਹੀ ਰਹਿੰਦਾ ਹਾਂ ਤੂੰ ਕਸ਼ਟ ਅਤੇ ਆਰਾਮ ਦੇਣਹਾਰ ਹੈਂ ਜੋ ਤੂੰ ਕਰਦਾ ਹੈਂਉਹੀ ਹੁੰਦਾ ਹੈ।॥
جِءُ توُنّ راکھہِ تِۄ ہیِ رہنھا دُکھُ سُکھُ دیۄہِ کرہِ سوئیِ 
جس پر اُس کی نظر عنایت و شفقت ہوتی ہے (1)رہاؤ۔
۔ دل میں حقیقت ۔ یا حق پرستی ۔
آپ مجھے جس طرح بھی رکھیں مجھے اسی کے مطابق زندگی گزارنی ہوگی۔ یہ آپ ہی ہیں جو درد یا خوشنودی دینے والے ہیں اور آپ جو بھی کرتے ہیں ، وہ ہوتا ہے۔

 ਆਸਾ ਮਨਸਾ ਦੋਊ ਬਿਨਾਸਤ ਤ੍ਰਿਹੁ ਗੁਣ ਆਸ ਨਿਰਾਸ ਭਈ ॥
aasaa mansaa do-oo binaasat tarihu gun aas niraas bha-ee.
By following the Guru’s teachings, worldly hopes and desires are dispelled and one can remain detached from the three traits (vice virtue and power) of Maya.
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪਿਆਂ ਹੀ ਮਾਇਆ ਵਾਲੀ ਆਸ ਤੇ ਲਾਲਸਾ ਮਿਟਦੀਆਂ ਹਨਤ੍ਰਿਗੁਣੀ ਮਾਇਆ ਦੀਆਂ ਆਸਾਂ ਤੋਂ ਨਿਰਲੇਪ ਰਹਿ ਸਕੀਦਾ ਹੈ
آسا منسا دوئوُ بِناست ت٘رِہُ گُنھ آس نِراس بھئیِ 
خدا کو بسنے نہیں دیتی ۔ پر خاوند۔ خدا ۔ سکھی ۔ ساتھی ۔ ساجنی ۔ دوست ۔ چرن سردیوؤ۔
گرو کی تعلیمات پر عمل کرنے سے ، دنیاوی امیدیں اور خواہشات دور ہوجاتی ہیں اور کوئی مایا کی تین خصلتوں (نائب خوبی اور طاقت) سے الگ رہ سکتا ہے۔

 ਤੁਰੀਆਵਸਥਾ ਗੁਰਮੁਖਿ ਪਾਈਐ ਸੰਤ ਸਭਾ ਕੀ ਓਟ ਲਹੀ ॥੪॥
turee-aavasthaa gurmukh paa-ee-ai sant sabhaa kee ot lahee. ||4||
The follower of the Guru attains the supreme spiritual state of mind by seeking refuge in the congregation of the saints ||4||
ਸਤਸੰਗ ਦਾ ਆਸਰਾ ਲੈਣ ਨਾਲਗੁਰੂ ਦੇ ਦੱਸੇ ਹੋਏ ਰਾਹੇ ਤੁਰ ਕੇ ਉਹ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਬਣਦੀ ਹੈ ਜਿਥੇ ਮਾਇਆ ਪੋਹ  ਸਕੇ 
 تُریِیاۄستھا گُرمُکھِ پائیِئےَ سنّت سبھا کیِ اوٹ لہیِ 
چھوؤں۔ خدمت کر وں ۔ ہر گر ۔ الہٰی مرشد ۔ کر پا۔ مہربانی ۔ ندر ۔ نظر عنائیت ۔(2)آپ۔ خوئیش ۔ وچار۔پرٹا ل۔ تحقیق مارمن۔ من کو زیر کرکے ۔ قابو پاکر
گرو کا پیروکار اولیاء کی جماعت میں پناہ مانگ کر اعلی روحانی ذہنی کیفیت کو حاصل کرتا ہے

 ਗਿਆਨ ਧਿਆਨ ਸਗਲੇ ਸਭਿ ਜਪ ਤਪ ਜਿਸੁ ਹਰਿ ਹਿਰਦੈ ਅਲਖ ਅਭੇਵਾ ॥
gi-aan Dhi-aan saglay sabh jap tap jis har hirdai alakh abhayvaa.
One, in whose heart dwells the invisible and incomprehensible God, attains all the merits of divine knowledge, meditation and penance.
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਅਲੱਖ ਤੇ ਅਭੇਵ ਪਰਮਾਤਮਾ ਵੱਸ ਪਏਉਸ ਨੂੰ ਮਾਨੋ ਸਾਰੇ ਜਪ ਤਪ ਗਿਆਨ ਧਿਆਨ ਪ੍ਰਾਪਤ ਹੋ ਗਏ
 گِیان دھِیان سگلے سبھِ جپ تپ جِسُ ہرِ ہِردےَ الکھ ابھیۄا 
۔ تم سامیت۔ تیرے جیسا دوست اور دوسرا جیؤ تو ں جیسے تیری رضا۔ تواکھیہہ۔ توحفاظت کرے ۔ تو ہی ۔ اسی طرح سے ـ(3)
آسامنا اُمیدیں اور ارادے ۔ کرییہہ و ترہوگن۔
ایک ، جس کے دل میں پوشیدہ اور سمجھ سے بالاتر خدا رہتا ہے ، وہ خدائی علم ، مراقبہ اور توبہ کی ساری خوبیوں کو حاصل کرتا ہے۔

 ਨਾਨਕ ਰਾਮ ਨਾਮਿ ਮਨੁ ਰਾਤਾ ਗੁਰਮਤਿ ਪਾਏ ਸਹਜ ਸੇਵਾ ॥੫॥੨੨॥
naanak raam naam man raataa gurmat paa-ay sahj sayvaa. ||5||22||
O’ Nanak, by following the Guru’s teachings, the mind is imbued with God’s Name and intuitively meditates on God. ||5||22||
ਹੇ ਨਾਨਕਗੁਰੂ ਦੀ ਮਤਿ ਤਾਬੇ ਮਨ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਵਿਚ ਰੰਗਿਆ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਤੇ ਅਡੋਲ ਅਵਸਥਾ ਵਿਚ ਟਿਕ ਕੇ ਸਿਮਰਨ ਕਰਦਾ ਹੈ l੨੨l
 نانک رام نامِ منُ راتا گُرمتِ پاۓ سہج سیۄا
دنیاوی ۔ تین وصف۔ رجو۔ ستو ۔ تمیو۔ ترقی سچائی اور لالچ ۔ نراس ۔ نا اُمید۔ تریا اوستھا۔ انسان کی ذہنی یا روحانی حالت 

جس کا راز معلوم نہ ہو سکے ۔ من راتا۔ مجذوب ہوا۔ گرمت سبق مرشد سے ۔ سہج ۔ سیوا ۔ پرسکون خدمت ۔
اے نانک گرو کی تعلیمات پر عمل کرکے ، دماغ خدا کے نام کے ساتھ رنگ جاتا ہے اور بدیہی طور پر خدا کا ذکر کرتا ہے۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ਪੰਚਪਦੇ ॥
aasaa mehlaa 1 panchpaday.
Raag Aasaa, PanchPadey (five liners), First Guru,:
 ਮੋਹੁ ਕੁਟੰਬੁ ਮੋਹੁ ਸਭ ਕਾਰ ॥
moh kutamb moh sabh kaar.
Emotional bonds to the family provides motivation to run after worldly affairs.
ਪਰਵਾਰ ਦੀ ਮਮਤਾ ਜਗਤ ਦੀ ਸਾਰੀ ਕਾਰ ਚਲਾ ਰਿਹਾ ਹੈ,
 موہُ کُٹنّبُ موہُ سبھ کار 
کٹنب۔ قبیلے ۔ خاندان۔
لواحقین سے جذباتی بندیاں دنیاوی امور کے پیچھے چلنے کی تحریک فراہم کرتی ہیں۔

 ਮੋਹੁ ਤੁਮ ਤਜਹੁ ਸਗਲ ਵੇਕਾਰ ॥੧॥
moh tum tajahu sagal vaykaar. ||1||
You should renounce all emotional attachments because they lead to evils. ||1||
ਤੂੰ ਸੰਸਾਰੀ ਮਮਤਾ ਨੂੰ ਛੱਡ ਦੇਇਸ ਸਭ ਪਾਪਾਂ ਦੀ ਮੂਲ ਹੈ 
موہُ تُم تجہُ سگل ۄیکار 
پریوار۔ ۔کار۔ کام ۔ تحہو۔
آپ کو تمام جذباتی منسلکات کو ترک کرنا چاہئے کیونکہ وہ برائیوں کا باعث بنے ہیں۔

 ਮੋਹੁ ਅਰੁ ਭਰਮੁ ਤਜਹੁ ਤੁਮ੍ਹ੍ਹ ਬੀਰ ॥
moh ar bharam tajahu tumH beer.
O’ brother, renounce your worldly attachments and doubts,
ਹੇ ਭਾਈ! (ਦੁਨੀਆ ਦਾਮੋਹ ਛੱਡ ਅਤੇ ਮਨ ਦੀ ਭਟਕਣਾ ਦੂਰ ਕਰ
موہُ ارُ بھرمُ تجہُ تُم٘ہ٘ہ بیِر 
چھوڑو۔ سگل۔ سارے ۔ وکار۔ بد فعل۔ (1)
اے بھائی ، آپ دنیاوی لگاؤ اور شبہات کو ترک کردیں ،

 ਸਾਚੁ ਨਾਮੁ ਰਿਦੇ ਰਵੈ ਸਰੀਰ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
saach naam riday ravai sareer. ||1|| rahaa-o.
One can meditate on the eternal God’s Name only after renouncing the worldly attachments. ||1||Pause||
ਮੋਹ ਤਿਆਗਿਆਂ ਹੀ ਮਨੁੱਖ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਅਟੱਲ ਨਾਮ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਸਿਮਰ ਸਕਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
ساچُ نامُ رِدے رۄےَ سریِر  رہاءُ 
بھرم۔ شک ۔ رد ۔ دلمیں ۔ ردے ۔ بسے (1)
کوئی دنیاوی لگاؤ ترک کرنے کے بعد ہی ابدی خدا کے نام پر غور کرسکتا ہے۔

 ਸਚੁ ਨਾਮੁ ਜਾ ਨਵ ਨਿਧਿ ਪਾਈ ॥
sach naam jaa nav niDh paa-ee.
When one realizes God’s Name which is like all the nine treasures of the world,
ਜਦੋਂ ਮਨੁੱਖ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਸਦਾਥਿਰ ਨਾਮ (-ਰੂਪਨੌਨਿਧਿ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰ ਲੈਂਦਾ ਹੈ,
سچُ نامُ جا نۄ نِدھِ پائیِ 
رہاؤ۔ نوندھ۔ نوخزانے کلپے ۔
جب کسی کو خدا کا نام معلوم ہوجاتا ہے جو دنیا کے تمام نو خزانوں کی طرح ہوتا ہے ،

 ਰੋਵੈ ਪੂਤੁ ਨ ਕਲਪੈ ਮਾਈ ॥੨॥
rovai poot na kalpai maa-ee. ||2||
then neither the son (mind) cries nor the mother (intellect) grieves. ||2||
 ਤਦ ਉਸ ਦੇ ਬੱਚੇ ਰੋਂਦੇ ਨਹੀਂ ਅਤੇ ਮਾਤਾ ਦੁਖੀ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦੀ 
روۄےَ پوُتُ ن کلپےَ مائیِ 
فکر مند۔ عاب زدہ ۔
تب نہ بیٹا (دماغ) روتا ہے اور نہ ہی ماں (عقل) غم کرتی ہے۔

 ਏਤੁ ਮੋਹਿ ਡੂਬਾ ਸੰਸਾਰੁ ॥
ayt mohi doobaa sansaar.
The entire world is so obsessed with worldly attachments, as if it is drowned in its vast ocean.
ਇਹ ਮੋਹ ਵਿਚ ਸਾਰਾ ਜਗਤ ਡੁੱਬਾ ਪਿਆ ਹੈ,
ایتُ موہِ ڈوُبا سنّسارُ 
(3) دیکھیا۔ سبق۔ نصیحت۔ جم پر۔
پوری دنیا دنیوی منسلکات کی لپیٹ میں ہے ، گویا یہ اپنے وسیع سمندر میں غرق ہے۔

 ਗੁਰਮੁਖਿ ਕੋਈ ਉਤਰੈ ਪਾਰਿ ॥੩॥
gurmukh ko-ee utrai paar. ||3||
Only a rare Guru’s follower is able to swim across the ocean of Maya. ||3||
ਕੋਈ ਵਿਰਲਾ ਮਨੁੱਖ ਜੋ ਗੁਰੂ ਦੇ ਦੱਸੇ ਰਸਤੇ ਤੇ ਤੁਰਦਾ ਹੈ (ਮੋਹ ਦੇ ਸਮੁੰਦਰ ਵਿਚੋਂਪਾਰ ਲੰਘਦਾ ਹੈ 
 گُرمُکھِ کوئیِ اُترےَ پار 
گورمکھ ۔ مرید مرشد ۔
صرف ایک نایاب گرو کا پیروکار مایا کے سمندر میں تیرنے کے قابل ہے۔

 ਏਤੁ ਮੋਹਿ ਫਿਰਿ ਜੂਨੀ ਪਾਹਿ ॥
ayt mohi fir joonee paahi.
Entangled in attachments, you would be reincarnated over and over again.
ਇਸ ਮੋਹ ਵਿਚ (ਫਸਿਆ ਹੋਇਆਤੂੰ ਮੁੜ ਮੁੜ ਜੂਨਾਂ ਵਿਚ ਪਏਂਗਾ l
ایتُ موہِ پھِرِ جوُنیِ پاہِ 
سپاہیؤں کے زیر کوتوالی
 منسلکہات میں الجھے ہوئے ، آپ کو بار بار جنم دیا جائے گا۔

 ਮੋਹੇ ਲਾਗਾ ਜਮ ਪੁਰਿ ਜਾਹਿ ॥੪॥
mohay laagaa jam pur jaahi. ||4||
Entangled in emotional attachment, you would face the demon of Death. ||4||
ਮੋਹ ਵਿਚ ਹੀ ਜਕੜਿਆ ਹੋਇਆ ਤੂੰ ਜਮਰਾਜ ਦੇ ਦੇਸ ਵਿਚ ਜਾਵੇਂਗਾ 
موہے لاگا جم پُرِ جاہِ 
تتے ۔ ختم ہوئے ۔ تھائے ٹھکانہ ۔
جذباتی لگاؤ میں الجھے ہوئے ، آپ کو موت کے فرشتہ کا سامنا کرنا پڑے گا۔

 ਗੁਰ ਦੀਖਿਆ ਲੇ ਜਪੁ ਤਪੁ ਕਮਾਹਿ ॥
gur deekhi-aa lay jap tap kamaahi.
Obtaining instruction from worldly gurus, people do ritual worship and penance,
ਜੇਹੜੇ ਬੰਦੇ (ਰਿਵਾਜੀਗੁਰੂ ਦੀ ਸਿੱਖਿਆ ਲੈ ਕੇ ਜਪ ਤਪ ਕਮਾਂਦੇ ਹਨ,
 گُر دیِکھِیا لے جپُ تپُ کماہِ 
جپ تپ۔ عبادت وریاضت ۔
دنیاوی گرووں کی ہدایت حاصل کرتے ہوئے ، لوگ رسمی عبادت اور توبہ کرتے ہیں ،

 ਨਾ ਮੋਹੁ ਤੂਟੈ ਨਾ ਥਾਇ ਪਾਹਿ ॥੫॥
naa moh tootai naa thaa-ay paahi. ||5||
their emotional attachment does not end with these rituals and they are not approved in God’s court. ||5||
ਇਹਨਾਂ ਜਪਾਂ ਤਪਾਂ ਨਾਲ ਉਹਨਾਂ ਦਾ ਮੋਹ ਟੁੱਟਦਾ ਨਹੀਂਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਹਜ਼ੂਰੀ ਵਿਚ ਕਬੂਲ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦੇ 
نا موہُ توُٹےَ نا تھاءِ پاہِ 
) ندر۔ نظر عنایت
ان کی جذباتی لگاؤ ان رسومات کے ساتھ ختم نہیں ہوتی ہے اور وہ خدا کی عدالت میں منظور نہیں ہوتے ہیں۔

 ਨਦਰਿ ਕਰੇ ਤਾ ਏਹੁ ਮੋਹੁ ਜਾਇ ॥
nadar karay taa ayhu moh jaa-ay.
If God bestows His Glance of Grace then this emotional attachment ends,
ਜੇਕਰ ਮਾਲਕ ਆਪਣੀ ਮਿਹਰ ਦੀ ਨਿਗ੍ਹਾ ਧਾਰੇਤਦ ਇਹ ਮੋਹ ਦੂਰ ਹੁੰਦਾ ਹੈ
ندرِ کرے تا ایہُ موہُ جاءِ 
۔ ہر سیؤ رہے سمائے ۔
اگر خدا اپنے فضل و کرم سے نوازتا ہے تو یہ جذباتی لگاؤ ختم ہوجاتا ہے ،

 ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਸਿਉ ਰਹੈ ਸਮਾਇ ॥੬॥੨੩॥
naanak har si-o rahai samaa-ay. ||6||23||
O’ Nanak, only then one remains absorbed in remembering God. ||6||23||
ਹੇ ਨਾਨਕਉਹ ਸਦਾ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਯਾਦ ਵਿਚ ਲੀਨ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ੨੩
 نانک ہرِ سِءُ رہےَ سماءِ
خدا میں مجذوب رہتا ہے ۔
اے نانک ، تب ہی ایک شخص خدا کی یاد میں مبتلا رہتا ہے۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ॥
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
 ਆਪਿ ਕਰੇ ਸਚੁ ਅਲਖ ਅਪਾਰੁ ॥
aap karay sach alakh apaar.
Incomprehensible, eternal and limitless God does everything Himself.
ਅਦ੍ਰਿਸ਼ਟਅਨੰਤ ਅਤੇ ਸੱਚਾ ਸੁਆਮੀ ਖੁਦ ਹੀ ਸਾਰਾ ਕੁੱਛ ਕਰਦਾ ਹੈ 
 آپِ کرے سچُ الکھ اپارُ 
آپ۔ خود خدا۔سچ جو صدیوں اور حقیقی ہے ۔
سمجھ سے باہر ، ابدی اور لا محدود خدا ہر کام خود کرتا ہے۔

 ਹਉ ਪਾਪੀ ਤੂੰ ਬਖਸਣਹਾਰੁ ॥੧॥
ha-o paapee tooN bakhsanhaar. ||1||
I am a sinner and You are the forgiver. ||1||
ਮੈਂ ਗੁਨਹਗਾਰ ਹਾਂ (ਪਰ ਫਿਰ ਭੀਤੂੰ ਬਖਸਣਹਾਰ ਹੈ 
ہءُ پاپیِ توُنّ بکھسنھہارُ 
الکھ جو حساب اور قیاس سے بعید ہے ۔۔ اپار۔ جو اتنا وسیع ہے کہ کوئی کنارا نہیں۔ 
میں گنہگار ہوں اور آپ معاف کرنے والے ہیں۔

 ਤੇਰਾ ਭਾਣਾ ਸਭੁ ਕਿਛੁ ਹੋਵੈ ॥
tayraa bhaanaa sabh kichh hovai.
O’ God, everything comes to pass by Your will.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਸਭ ਕੁਝ ਉਹੀ ਹੁੰਦਾ ਹੈ ਜੋ ਤੈਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ
 تیرا بھانھا سبھُ کِچھُ ہوۄےَ 
ہوں میں۔ پاپی ۔ گناہگار ۔ بخشنہار ۔ بخشنے والا۔ مہربان (1)
اے خدا ، سب کچھ آپ کی مرضی سے ہوتا ہے۔

 ਮਨਹਠਿ ਕੀਚੈ ਅੰਤਿ ਵਿਗੋਵੈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
manhath keechai ant vigovai. ||1|| rahaa-o.
One who acts out of the obstinacy of one’s mind is ruined in the end. |1||Pause|
ਮਨੁੱਖ ਨਿਰੇ ਆਪਣੇ ਮਨ ਦੇ ਹਠ ਨਾਲ (ਆਪਣੀ ਅਕਲ ਦਾ ਆਸਰਾ ਲੈ ਕੇਕੰਮ ਕਰਨ ਤੇ ਆਖ਼ਰ ਖ਼ੁਆਰ ਹੁੰਦਾ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
منہٹھِ کیِچےَ انّتِ ۄِگوۄےَ  رہاءُ 
بھانا۔ ۔رضا ۔ فرمان۔ من ہٹھ۔ ولی ضد۔ انت۔ آخر۔
جو شخص کسی کے ذہن کی رکاوٹ سے دور کام کرتا ہے وہ آخر میں برباد ہوجاتا ہے۔

 ਮਨਮੁਖ ਕੀ ਮਤਿ ਕੂੜਿ ਵਿਆਪੀ ॥
manmukh kee mat koorh vi-aapee.
The intellect of the self-willed person remains engrossed in falsehood.
ਆਪਣੇ ਮਨ ਦੇ ਪਿਛੇ ਤੁਰਨ ਵਾਲੇ ਮਨੁੱਖ ਦੀ ਅਕਲ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਫਸੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ,
منمُکھ کیِ متِ کوُڑِ ۄِیاپیِ 
وگووے ۔ ذلیل وخوار ہوتا ہے (1) رہاؤ۔
خودی والے کی عقل باطل میں مگن رہتی ہے۔

 ਬਿਨੁ ਹਰਿ ਸਿਮਰਣ ਪਾਪਿ ਸੰਤਾਪੀ ॥੨॥
bin har simran paap santaapee. ||2||
Without remembering God, it suffers in sin. ||2||
ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਸਿਮਰਨ ਤੋਂ ਖੁੰਝ ਕੇ (ਮਾਇਆ ਦੇ ਲਾਲਚ ਵਿਚ ਕੀਤੇਕਿਸੇ ਮੰਦਕਰਮ ਦੇ ਕਾਰਨ ਦੁਖੀ ਹੁੰਦੀ ਹੈ 
بِنُ ہرِ سِمرنھ پاپِ سنّتاپیِ 
منمکھ۔ ۔خودی پسند مت۔ ۔سمجھ ۔ عقل ۔کوڑ ۔ 
خدا کو یاد کیے بغیر ، یہ گناہ میں مبتلا ہے۔

 ਦੁਰਮਤਿ ਤਿਆਗਿ ਲਾਹਾ ਕਿਛੁ ਲੇਵਹੁ ॥
durmat ti-aag laahaa kichh layvhu.
Renounce your evil intellect and reap some spiritual benefit.
(ਹੇ ਭਾਈਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਫਸੀਭੈੜੀ ਮਤਿ ਤਿਆਗ ਕੇ ਕੁਝ ਆਤਮਕ ਲਾਭ ਭੀ ਖੱਟੋ,
دُرمتِ تِیاگِ لاہا کِچھُ لیۄہُ 
جھوٹھ ۔ ویاپی ۔ بسی رہتی ہے ۔ 
اپنی بری عقل کو ترک کریں اور کچھ روحانی فائدہ اٹھائیں۔

 ਜੋ ਉਪਜੈ ਸੋ ਅਲਖ ਅਭੇਵਹੁ ॥੩॥
jo upjai so alakh abhayvhu. ||3||
Whatever is created, has originated from the incomprehensible and unfathomable God. ||3||
ਜੋ ਕੁਝ ਪੈਦਾ ਹੋਇਆ ਹੈਉਸ ਅਲਖ ਤੇ ਅਭੇਦ ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਹੀ ਪੈਦਾ ਹੋਇਆ ਹੈ 
جو اُپجےَ سو الکھ ابھیۄہُ 
ہرسمرن۔ الہٰی یاد ۔ پاپ۔ گناہ۔ حساب وقیاس سے بعید ۔ بھیو ابھیو یہو۔
جو کچھ بھی تخلیق کیا گیا ہے ، وہ ناقابل فہم اور ناقابل معافی خدا سے پیدا ہوا ہے۔

 ਐਸਾ ਹਮਰਾ ਸਖਾ ਸਹਾਈ ॥
aisaa hamraa sakhaa sahaa-ee.
Our friend, God is always there to help us.
ਸਾਡਾ ਮਿੱਤ੍ਰ ਪ੍ਰਭੂ ਸਦਾ ਸਹਾਇਤਾ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈ
ایَسا ہمرا سکھا سہائیِ 
سنتاپی ۔ عذاب پاتا ہے ۔(1)
ہمارے دوست ، خدا ہمیشہ ہماری مدد کرنے کے لئے موجود ہے۔

 ਗੁਰ ਹਰਿ ਮਿਲਿਆ ਭਗਤਿ ਦ੍ਰਿੜਾਈ ॥੪॥
gur har mili-aa bhagat darirhaa-ee. ||4||
With God’s grace one meets with the Guru and the Guru’s teachings motivate him for meditation on God. ||4||
ਉਸ ਦੀ ਮੇਹਰ ਨਾਲ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪੈਂਦਾ ਹੈਗੁਰੂ ਉਸ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਭਗਤੀ ਦੀ ਹੀ ਤਾਕੀਦ ਕਰਦਾ ਹੈ 
 گُر ہرِ مِلِیا بھگتِ د٘رِڑائیِ 
درمت۔ بد عقلی ۔ تیاگ چھوڑ کر۔ لاہا۔ منافع ۔ اُپجے ۔ پیدا ہوتا ہے ۔ الکھ۔
خدا کے فضل سے کوئی گرو سے ملتا ہے اور گرو کی تعلیمات ہی اسے خدا پر غور کرنے کی ترغیب دیتی ہیں۔

 ਸਗਲੀ ਸਉਦੀ ਤੋਟਾ ਆਵੈ ॥
sagleeN sa-odeeN totaa aavai.
Except meditation on Naam, there is spiritual loss in all kinds of worldly trades,
(ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਵਿਸਾਰ ਕੇ) ਸਾਰੇ ਦੁਨਿਆਵੀ ਸੌਦਿਆਂ ਵਿਚ ਘਾਟਾ ਹੀ ਘਾਟਾ ਹੈ (ਉਮਰ ਵਿਅਰਥ ਗੁਜ਼ਰਦੀ ਜਾਂਦੀ ਹੈ);
 سگلیِ سئُدیِ توٹا آۄےَ 
سکھا۔ ساتھی ۔ سہائی ۔ مدد گار۔ درڑائی ۔ پکی نابھولنے والی
نام پر غور کرنے کے علاوہ ، ہر طرح کے دنیاوی تجارت میں روحانی نقصان ہوتا ہے ،

 ਨਾਨਕ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਮਨਿ ਭਾਵੈ ॥੫॥੨੪॥
naanak raam naam man bhaavai. ||5||24||
therefore God’s Name is pleasing to my mind, says Nanak. ||5||24||
ਨਾਨਕ ਦੇ ਚਿੱਤ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ੨੪
نانک رام نامُ منِ بھاۄےَ
رام نام۔ الہٰی نام۔ من بھاوے ۔ اچھا لگتا ہے ۔
اے نانک میرے دل کو الہٰی نام پیارا لگتا ہے ۔

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ਚਉਪਦੇ ॥
aasaa mehlaa 1 cha-upday.
Raag Aasaa, chau-padas (four liners), First Guru:
 ਵਿਦਿਆ ਵੀਚਾਰੀ ਤਾਂ ਪਰਉਪਕਾਰੀ ॥
vidi-aa veechaaree taaN par-upkaaree.
When one reflects on the real purpose of education then one becomes a philanthropist.
ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਦੂਜਿਆਂ ਨਾਲ ਭਲਾਈ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੋ ਗਿਆ ਹੈ ਤਾਂ ਹੀ ਸਮਝੋ ਕਿ ਉਹ ਵਿੱਦਿਆ ਪਾ ਕੇ ਵਿਚਾਰਵਾਨ ਬਣਿਆ ਹੈ
ۄِدِیا ۄیِچاریِ تاں پرئُپکاریِ 
اگر تو یم ودیا۔ علم ۔ ویچاری ۔
جب کوئی تعلیم کے اصل مقصد پر غور کرتا ہے تو کوئی انسان دوست انسان بن جاتا ہے۔ 

 ਜਾਂ ਪੰਚ ਰਾਸੀ ਤਾਂ ਤੀਰਥ ਵਾਸੀ ॥੧॥
jaaN panch raasee taaN tirath vaasee. ||1||
When one conquers the five passions then he becomes a true dweller at the sacred shrine of pilgrimage. ||1||
ਤੀਰਥਾਂ ਤੇ ਨਿਵਾਸ ਰੱਖਣ ਵਾਲਾ ਤਦੋਂ ਹੀ ਸਫਲ ਹੈਜੇ ਉਸ ਨੇ ਪੰਜੇ ਕਾਮਾਦਿਕ ਵੱਸ ਕਰ ਲਏ ਹਨ 
جاں پنّچ راسیِ تاں تیِرتھ ۄاسیِ 
اسے یر غور لایا ہو۔ پراپکاری تاکی کابھلا ہو سکتا ہے ۔ پنچ راسی۔ اگر پانچوں بد احساسات پر قابو ہو
جب کوئی پانچ جذبات کو فتح کرتا ہے تب وہ مقدس زیارت کے مقام پر واقعی رہائش پزیر ہوجاتا ہے۔

 ਘੁੰਘਰੂ ਵਾਜੈ ਜੇ ਮਨੁ ਲਾਗੈ ॥
ghunghroo vaajai jay man laagai.
That alone is true ringing of anklets is part of the devotional worship when my mind remains attuned to God.
ਉਹ ਹੀ ਭਗਤੀਆ ਬਣ ਕੇ ਘੁੰਘਰੂ ਵਜਾਣੇ ਸਫਲ ਹਨ, ਜੇ ਮੇਰਾ ਮਨ ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੁੜਨਾ ਸਿੱਖ ਜਾਵੇ l
گھُنّگھروُ ۄاجےَ جے منُ لاگےَ 
۔ تیرتھ واسی۔ یہی زیارت گاہوں کی سکونت ہے ۔ (1)گھنگر وواجے ۔ گھنگرؤں کی جھنکار تبھی ہے ۔ 
صرف یہ ہی سچ ہے کہ ٹخنوں کی گھنٹی بجنا اس عقیدت مند عبادت کا حصہ ہے جب میرا دماغ خدا سے مطابقت رکھتا ہے۔

 ਤਉ ਜਮੁ ਕਹਾ ਕਰੇ ਮੋ ਸਿਉ ਆਗੈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
 ta-o jam kahaa karay mo si-o aagai. ||1|| rahaa-o.
Then, what can the demon of death do me hereafter? ||1||Pause||
ਤਦ ਮੌਤ ਦਾ ਦੂਤ ਅੱਗੇ ਮੈਨੂੰ ਕੀ ਕਰ ਸਕਦਾ ਹੈ ਰਹਾਉ 
تءُ جمُ کہا کرے مو سِءُ آگےَ  رہاءُ 
جے من لاگے ۔ اگر دلی محبت اور لگن ہو۔ تو ؤ جم کہا کرے
پھر اس کے بعد موت کا فرشتہ مجھے کیا کرسکتا ہے؟

 ਆਸ ਨਿਰਾਸੀ ਤਉ ਸੰਨਿਆਸੀ ॥
aas niraasee ta-o sani-aasee.
When one abandons worldly desires then one become a true renouncer.
ਜੇ ਸਭ ਮਾਇਕਆਸਾਂ ਵਲੋਂ ਉਪਰਾਮ ਹੈ ਤਾਂ ਸਮਝੋ ਇਹ ਸੰਨਿਆਸੀ ਹੈ
آس نِراسیِ تءُ سنّنِیاسیِ 
(رہاؤ) تب سپاہ الہٰی کیا کر سکتا ہے ۔
جب کوئی دنیاوی خواہشات کو ترک کر دیتا ہے تو پھر ایک سچے ترک کرنے والا بن جاتا ہے۔

 ਜਾਂ ਜਤੁ ਜੋਗੀ ਤਾਂ ਕਾਇਆ ਭੋਗੀ ॥੨॥
jaaN jat jogee taaN kaa-i-aa bhogee. ||2||
If a householder can practice abstinence like a Yogi, then he is a true Yogi. ||2||
ਜੇ ਗ੍ਰਿਹਸਤੀ ਹੁੰਦਿਆਂ ਜੋਗੀ ਵਾਲਾ ਜਤ ਕਾਇਮ ਹੈ ਤਾਂ ਉਸ ਨੂੰ ਅਸਲ ਜੋਗੀ ਜਾਣੋ 
جاں جتُ جوگیِ تاں کائِیا بھوگیِ 
موسیؤ۔ میرے ساتھ۔ آس۔ اُمید ۔ نراس نااُمید
اگر گھریلو شخص یوگی کی طرح پرہیزی کا عمل کرسکتا ہے ، تو وہ سچا یوگی ہے۔

 ਦਇਆ ਦਿਗੰਬਰੁ ਦੇਹ ਬੀਚਾਰੀ ॥
da-i-aa digambar dayh beechaaree.
A true Digambar (naked hermit) is the one who is compassionate and is free of vices .
ਉਹ ਅਸਲ ਨਗਨ ਸਾਧੂ ਹੈਜੋ ਤਰਸ ਕਰਦਾ ਹੈ ਅਤੇ ਆਪਣੇ ਸਰੀਰ ਨੂੰ ਵਿਕਾਰਾਂ ਵਲੋਂ ਪਵਿੱਤ੍ਰ ਰੱਖਣ ਦੀ ਵਿਚਾਰ ਵਾਲਾ ਭੀ ਹੈ
دئِیا دِگنّبرُ دیہ بیِچاریِ 
 رحم ترس۔ دگنھبر 
ایک سچا ڈیگمبر (ننگے مدہوشی) وہ ہے جو ہمدرد ہے اور بےدینوں سے پاک ہے۔

 ਆਪਿ ਮਰੈ ਅਵਰਾ ਨਹ ਮਾਰੀ ॥੩॥
aap marai avraa nah maaree. ||3||
A true practitioner of nonviolence is the one who doesn’t kill others but eliminates his worldly desires . ||3||
ਅਸਲ ਅਹਿੰਸਾਵਾਦੀ ਉਹ ਹੈ ਜੋ ਹੋਰਨਾਂ ਨੂੰ ਨਹੀਂ ਮਾਰਦਾ ਪਰ ਆਪਣੇ ਵਿਕਾਰਾਂ ਨੂੰ ਮਾਰਦਾ ਹੈ 
آپِ مرےَ اۄرا نہ ماریِ 
حقیقی پیروکار
عدم تشدد کا ایک حقیقی پیروکار وہ ہے جو دوسروں کو نہیں مارتا بلکہ اپنی دنیاوی خواہشات کو ختم کرتا ہے۔

 ਏਕੁ ਤੂ ਹੋਰਿ ਵੇਸ ਬਹੁਤੇਰੇ ॥
ayk too hor vays bahutayray.
O’ God, You are only one but myriad are Your forms.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਤੂੰ ਕੇਵਲ ਇਕ ਹੀ ਹੈਂ ਅਤੇ ਅਨੇਕਾਂ ਹਨ ਤੇਰੇ ਵੇਸ l
 ایکُ توُ ہورِ ۄیس بہُتیرے 
آپ کی شکلیں ہیں۔
اے خدا ، آپ صرف ایک ہی ہیں لیکن ہزارہا آپ کی شکلیں ہیں۔

 ਨਾਨਕੁ ਜਾਣੈ ਚੋਜ ਨ ਤੇਰੇ ॥੪॥੨੫॥
naanak jaanai choj na tayray. ||4||25||
Nanak can not comprehend Your wondrous plays. ||4||25||
ਨਾਨਕ (ਵਿਚਾਰਾਤੇਰੇ ਕੌਤਕਤਮਾਸ਼ੇ ਸਮਝ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ ੨੫
نانکُ جانھےَ چوج ن تیرے
حیرت انگیز ڈراموں
نانک آپ کے حیرت انگیز ڈراموں کا ادراک نہیں کرسکتا

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੧ ॥
aasaa mehlaa 1.
Raag Aasaa, First Guru:
 ਏਕ ਨ ਭਰੀਆ ਗੁਣ ਕਰਿ ਧੋਵਾ ॥
ayk na bharee-aa gun kar Dhovaa.
I am not stained by only one sin that could be washed by acquiring virtues.
ਮੈਂ ਕਿਸੇ ਸਿਰਫ਼ ਇੱਕ ਔਗੁਣ ਨਾਲ ਲਿੱਬੜੀ ਹੋਈ ਨਹੀਂ ਹਾਂ ਕਿ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰ ਗੁਣ ਪੈਦਾ ਕਰ ਕੇ ਉਸ ਇੱਕ ਔਗੁਣ ਨੂੰ ਧੋ ਸਕਾਂ i
ایک ن بھریِیا گُنھ کرِ دھوۄا 
میں صرف ایک ہی گناہ سے داغدار نہیں ہوں جو خوبیوں کے حصول سے دھو سکتا ہوں۔

 ਮੇਰਾ ਸਹੁ ਜਾਗੈ ਹਉ ਨਿਸਿ ਭਰਿ ਸੋਵਾ ॥੧॥
mayraa saho jaagai ha-o nis bhar sovaa. ||1||
While my spouse-God is awake (waiting for me to remember Him), I sleep through the entire night of my life busy in worldly pursuits. ||1||
ਮੈਂ ਤਾਂ ਸਾਰੀ ਉਮਰਰਾਤ ਮੋਹ ਦੀ ਨੀਂਦ ਵਿਚ ਸੁੱਤੀ ਰਹੀ ਹਾਂਤੇ ਮੇਰਾ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਜਾਗਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ 
میرا سہُ جاگےَ ہءُ نِسِ بھرِ سوۄا 
جب کہ میرا شریک حیات خدا بیدار ہے (

 ਇਉ ਕਿਉ ਕੰਤ ਪਿਆਰੀ ਹੋਵਾ ॥
i-o ki-o kant pi-aaree hovaa.
In this way, how can I become dear to my Husband-God?
ਅਜੇਹੀ ਹਾਲਤ ਵਿਚ ਮੈਂ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਕਿਵੇਂ ਪਿਆਰੀ ਲੱਗ ਸਕਦੀ ਹਾਂ?
 اِءُ کِءُ کنّت پِیاریِ ہوۄا 
اس طرح ، میں اپنے شوہر خدا کو کیسے پیارا ہوسکتا ہوں؟

 ਸਹੁ ਜਾਗੈ ਹਉ ਨਿਸ ਭਰਿ ਸੋਵਾ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
saho jaagai ha-o nis bhar sovaa. ||1|| rahaa-o.
when husband-God is awake waiting for me to remember Him, while I sleep through the entire night of my life busy in worldly pursuits.||1||Pause||
ਖਸਮ ਜਾਗਦਾ ਹੈ ਤੇ ਮੈਂ ਸਾਰੀ ਰਾਤ ਸੁੱਤੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹਾਂ  ਰਹਾਉ 
سہُ جاگےَ ہءُ نِس بھرِ سوۄا  رہاءُ 
جب شوہر-خدا بیدار ہوکر میرا انتظار کرتے ہوئے اس کا ذکر کریں ، جب کہ میں پوری زندگی پوری دنیا کے حصول میں مصروف رہتا ہوں۔