Urdu-Page-294

ਬਨਿ ਤਿਨਿ ਪਰਬਤਿ ਹੈ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮੁ ॥
ban tin parbat hai paarbarahm.
The Supreme God is permeating in the forests, fields and mountains.
ਉਹ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਜੰਗਲ ਵਿਚ ਹੈਘਾਹ (ਆਦਿਕਵਿਚ ਹੈ ਤੇ ਪਰਬਤ ਵਿਚ ਹੈ l
بنِ تِنِ پربتِ ہےَ پارب٘رہمُ
۔ بن ۔ جنگل۔ تن۔ تنکا ۔ گھاس۔ پربت۔ پہاڑ۔
جنگل تنکے اور پہاڑوں میں ہے پاک خدا۔ 

 ਜੈਸੀ ਆਗਿਆ ਤੈਸਾ ਕਰਮੁ ॥
jaisee aagi-aa taisaa karam.
As is His command, so is the deed of the creature.
ਜਿਹੋ ਜਿਹਾ ਉਹ ਹੁਕਮ (ਕਰਦਾ ਹੈ), ਉਹੋ ਜਿਹਾ (ਜੀਵਕੰਮ ਕਰਦਾ ਹੈ;
جیَسی آگِیا تیَسا کرمُ
کرم۔ اعمال
جیسا جیسا ہے فرمان الہٰی ویسا ہی اعمال ہوتا رہتا ہے ۔ 

 ਪਉਣ ਪਾਣੀ ਬੈਸੰਤਰ ਮਾਹਿ ॥
pa-un paanee baisantar maahi.
He permeates the wind, the water and the fire.
ਸੁਆਮੀ ਹਵਾਜਲ ਅਤੇ ਅੱਗ ਅੰਦਰ ਸਭ ਥਾਈਂ ਸਮਾਇਆ ਹੋਇਆ ਹੈ 
پئُݨ پاݨی بیَسنّتر ماہِ
آگ ہوااور پانی میں 

 ਚਾਰਿ ਕੁੰਟ ਦਹ ਦਿਸੇ ਸਮਾਹਿ ॥
chaar kunt dah disay samaahi.
He pervades in the four corners and in the ten directions (exists everywhere).
ਉਹ ਚਹੁੰ ਕੂਟਾਂ ਵਿਚ ਦਸੀਂ ਪਾਸੀਂ (ਸਭ ਥਾਈਂਸਮਾਇਆ ਹੋਇਆ ਹੈ 
چارِ کُنّٹ دہ دِسے سماہِ
۔ چارکنٹ۔ چاروں طرفوں میں۔ دیہہ دسے ۔ ہرجا ۔ سماہے ۔ بستا ہے ۔
چاروں طرف اور ہر جگہ نور الہٰی ہے ۔ 

 ਤਿਸ ਤੇ ਭਿੰਨ ਨਹੀ ਕੋ ਠਾਉ ॥
tis tay bhinn nahee ko thaa-o.
There is no place where He is not.
ਕੋਈ (ਭੀਥਾਂ ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਵੱਖਰਾ ਨਹੀਂ ਹੈ;
تِس تے بھِنّن نہی کۄ ٹھاءُ
بھن۔ جدا۔ ٹھا ؤ۔ ٹھکانہ ۔
بغیر نہیں اس کے کوئی جا ۔ ہر جا وہ بستا ہے ۔ 

 ਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ਨਾਨਕ ਸੁਖੁ ਪਾਉ ॥੨॥
gur parsaad naanak sukh paa-o. ||2||
O’ Nanak, peace is received by the Guru’s Grace. ||2||
ਹੇ ਨਾਨਕਆਨੰਦ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ 
گُر پ٘رسادِ نانک سُکھُ پاءُ
گر پرساد۔ رحمت مرشد سے ۔
رحمت مرشد سے نانک سکون ملتا ہے ۔ 

 ਬੇਦ ਪੁਰਾਨ ਸਿੰਮ੍ਰਿਤਿ ਮਹਿ ਦੇਖੁ ॥
bayd puraan simrit meh daykh.
Behold Him in the teachings of Vedas, the Puranas and the Smritis.
ਵੇਦਾਂ ਵਿਚਪੁਰਾਣਾਂ ਵਿਚਸਿਮ੍ਰਿਤਿਆਂ ਵਿਚ (ਓਸੇ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰਤੱਕੋ;
بید پُران سِنّم٘رِتِ مہِ دیکھُ
ویدوں پرانوں سمرتیوں کا مطالعہ کر دیکھتا ہے ۔ 

 ਸਸੀਅਰ ਸੂਰ ਨਖ੍ਯ੍ਯਤ੍ਰ ਮਹਿ ਏਕੁ ॥
sasee-ar soor nakh-yatar meh ayk.
The same One is permeating in the moon, the sun and the stars.
ਚੰਦ੍ਰਮਾਸੂਰਜਤਾਰਿਆਂ ਵਿਚ ਭੀ ਇਕ ਉਹੀ ਹੈ;
سسیِئر سۄُر نکھ٘ېت٘ر مہِ ایکُ
سیر ۔ چندر ما۔ سور۔ سورج ۔ نکھتر۔ تارے
چاند سورج اور تاروں میں ہے نور اسی کا اس کے نور سے ان کا اُجالا ہے 

 ਬਾਣੀ ਪ੍ਰਭ ਕੀ ਸਭੁ ਕੋ ਬੋਲੈ ॥
banee prabh kee sabh ko bolai.
Everyone utters God’s word,
ਹਰੇਕ ਜੀਵ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੀ ਹੀ ਬੋਲੀ ਬੋਲਦਾ ਹੈ;
باݨی پ٘ربھ کی سبھُ کۄ بۄلےَ
۔ بانی پر بھ کی ۔ کلام الہٰی۔
۔ ہر ایک کو کلام الہٰی کہتاہے ۔ 

 ਆਪਿ ਅਡੋਲੁ ਨ ਕਬਹੂ ਡੋਲੈ ॥
aap adol na kabhoo dolai.
But despite being present in all, He Himself is unshakable and never wavers.
(ਪਰ ਸਭ ਵਿਚ ਹੁੰਦਿਆਂ ਭੀਉਹ ਆਪ ਅਡੋਲ ਹੈ ਕਦੇ ਡੋਲਦਾ ਨਹੀਂ
آپِ اڈۄلُ ن کبہۄُ ڈۄلےَ
ا ڈول۔ بلا لرزش۔ بلا ڈگمگائے ۔
بے لرزش ہے وہ نہ لرزش میں آتا ہے 

 ਸਰਬ ਕਲਾ ਕਰਿ ਖੇਲੈ ਖੇਲ ॥
sarab kalaa kar khaylai khayl.
After creating all powers, He is playing the worldly games.
ਸਾਰੀਆਂ ਤਾਕਤਾਂ ਰਚ ਕੇ (ਜਗਤ ਦੀਆਂਖੇਡਾਂ ਖੇਡ ਰਿਹਾ ਹੈ,.
سرب کلا کرِ کھیلےَ کھیل
سرب۔ تمام۔ کلا۔ طاقتوں
۔ سب طاقتوں سے ہے مرقع اور ہے عالم میں اپنی کھیل کھیل رہا 

 ਮੋਲਿ ਨ ਪਾਈਐ ਗੁਣਹ ਅਮੋਲ ॥
mol na paa-ee-ai gunah amol.
His virtues are invaluable and His eminence cannot be assessed.
ਉਹ ਅਮੋਲਕ ਗੁਣਾਂ ਵਾਲਾ ਹੈਉਸ ਦਾ ਮੁੱਲ ਪਾਇਆ ਨਹੀਂ ਜਾ ਸਕਦਾ 
مۄلِ ن پائیِۓَ گُݨہ امۄل
۔ گنیہہ امول۔ بے مول۔ بے قیمت اوصاف۔
۔ اوصاف کے اس کی کوئی قیمت پا سکتا نہیں۔ 

 ਸਰਬ ਜੋਤਿ ਮਹਿ ਜਾ ਕੀ ਜੋਤਿ ॥
sarab jot meh jaa kee jot.
He, whose light illuminates all creatures,
ਜਿਸ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਜੋਤਿ ਸਾਰੀਆਂ ਜੋਤਾਂ ਵਿਚ (ਜਗ ਰਹੀ ਹੈ)
سرب جۄتِ مہِ جا کی جۄتِ
سرب جوت۔ تمام نوروں۔
سب نوروں میں نور ہے اسکا 


ਧਾਰਿ ਰਹਿਓ ਸੁਆਮੀ ਓਤਿ ਪੋਤਿ ॥
Dhaar rahi-o su-aamee ot pot.
 that Master is providing support to all through and through.
ਉਹ ਮਾਲਕ ਤਾਣੇ ਪੇਟੇ ਵਾਂਗ (ਸਭ ਨੂੰਆਸਰਾ ਦੇ ਰਿਹਾ ਹੈ l
دھارِ رہِئۄ سُیامی اۄتِ پۄتِ
اوت پوت۔ تانے پیٹے کی مانند۔
تانے پیٹے کی مانند سب میں وہ بستا ہے ۔,

 ਗੁਰ ਪਰਸਾਦਿ ਭਰਮ ਕਾ ਨਾਸੁ ॥ 
gur parsaad bharam kaa naas.
They, whose doubt is dispelled by the Guru’s grace.
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਦਾ ਭਰਮ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਟ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
گُر کا ناسُ پرسادِ بھرم
بھرم۔ شک و شبہات۔
ان کے شک و شبہات ختم ہوجاتےہیں

 ਨਾਨਕ ਤਿਨ ਮਹਿ ਏਹੁ ਬਿਸਾਸੁ ॥੩॥
 naanak tin meh ayhu bisaas. ||3||
O’ Nanak, they firmly believe that God is omnipotent. ||3||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੀ ਇਸ ਸਰਬਵਿਆਪਕ ਹਸਤੀ ਦਾਇਹ ਯਕੀਨ ਉਹਨਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਦੇ ਅੰਦਰ ਬਣਦਾ ਹੈ l
نانک تِن مہِ ایہُ بِساسُ
بساس ۔ یقین۔ بھروسا ۔
اے نانک جنہں بھروسا ہوجاتا ہے 

 ਸੰਤ ਜਨਾ ਕਾ ਪੇਖਨੁ ਸਭੁ ਬ੍ਰਹਮ ॥
sant janaa kaa paykhan sabh barahm.
The Saints behold God everywhere.
ਸੰਤ ਜਨ ਹਰ ਥਾਂ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਨੂੰ ਹੀ ਵੇਖਦੇ ਹਨ,
سنّت جنا کا پیکھنُ سبھُ ب٘رہم
پیکھن ۔ دیکھنا۔ ہردے ۔ دل میں
عارفان الہٰی کے دل کی نظر ہر وقت خدا پر پڑتی ہے ۔

 ਸੰਤ ਜਨਾ ਕੈ ਹਿਰਦੈ ਸਭਿ ਧਰਮ ॥
sant janaa kai hirdai sabh Dharam.
In the heart of the Saints, all thoughts that arise are of righteousness.
ਉਹਨਾਂ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਸਾਰੇ (ਖ਼ਿਆਲਧਰਮ ਦੇ ਹੀ (ਉਠਦੇ ਹਨ)
سنّت جنا کےَ ہِردےَ سبھِ دھرم
دھرم۔ انسانی فرائض۔ سبھ ۔ نیک ۔
عارفان الہٰی کے دل میں فرض انسانی بستے ہیں۔

 ਸੰਤ ਜਨਾ ਸੁਨਹਿ ਸੁਭ ਬਚਨ ॥
sant janaa suneh subh bachan.
The Saints listen words of goodness only,
ਸੰਤ ਜਨ ਭਲੇ ਬਚਨ ਹੀ ਸੁਣਦੇ ਹਨ,
سنّت جنا سُنہِ سُبھ بچن
بچن۔ گفتار۔ کلام۔
عارفان الہٰی سنتے ہیں نیک کلام 

 ਸਰਬ ਬਿਆਪੀ ਰਾਮ ਸੰਗਿ ਰਚਨ ॥
sarab bi-aapee raam sang rachan.
and always remain absorbed in the all-pervading God.
ਤੇ ਸਭ ਥਾਈਂ ਵਿਆਪਕ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਨਾਲ ਜੁੜੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ
سرب بِیاپی رام سنّگِ رچن
رچن۔ ملاپ ۔
ہرجاہے جسکا نور سار جہاں نورانی ہے ۔ اس سے ہے رشتہ ناطہ اسی میں مجذوب ہین وہ 

 ਜਿਨਿ ਜਾਤਾ ਤਿਸ ਕੀ ਇਹ ਰਹਤ ॥ 
jin jaataa tis kee ih rahat.
Such is the way of life of the one who has realized God
ਜਿਸ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਜਾਣ ਲਿਆ ਹੈ ਉਸ ਦੀ ਰਹਿਣੀ ਹੀ ਇਹ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ,
جِنِ جاتا تِس کی اِہ رہت
جاتا ۔ پہچانا۔ رہت ۔ روزمرہ کی طرز زندگی ۔
۔ جس نے پہچان لیا خدا کو روز مرہ کی زندگی ایسی ہوجاتی ہے ۔

 ਸਤਿ ਬਚਨ ਸਾਧੂ ਸਭਿ ਕਹਤ ॥
sat bachan saaDhoo sabh kahat.
that saint utters only the divine words (words of God’s praises).
ਉਹ ਸੰਤ ਜਨ ਸਦਾ ਸੱਚੇ ਬਚਨ ਬੋਲਦਾ ਹੈ l 
ستِ بچن سادھۄُ سبھِ کہت
ست۔ سچے ۔
۔ کہ ہمیشہ زبان سے سچے بول ہیں بولتے ۔ 

 ਜੋ ਜੋ ਹੋਇ ਸੋਈ ਸੁਖੁ ਮਾਨੈ ॥
jo jo ho-ay so-ee sukh maanai.
Whatever happens, he peacefully accepts.
ਜੋ ਕੁਝ (ਪ੍ਰਭੂ ਵਲੋਂਹੁੰਦਾ ਹੈ ਉਸੇ ਨੂੰ ਸੁਖ ਮੰਨਦਾ ਹੈ,
جۄ جۄ ہۄءِ سۄئی سُکھُ مانےَ
جو ہو رہا ہے اسے ہی سکھ سمجھتے ہیں

 ਕਰਨ ਕਰਾਵਨਹਾਰੁ ਪ੍ਰਭੁ ਜਾਨੈ ॥
karan karaavanhaar parabh jaanai.
He knows, God as the Doer, the Cause of causes.
ਸਭ ਕੰਮ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਤੇ (ਜੀਆਂ ਪਾਸੋਂਕਰਾਉਣ ਵਾਲਾ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਹੀ ਜਾਣਦਾ ਹੈ
کرن کراونہارُ پ٘ربھُ جانےَ
۔ سب کچھ کرنے اور کرانے والا خدا کو ہی مانتے ہیں

 ਅੰਤਰਿ ਬਸੇ ਬਾਹਰਿ ਭੀ ਓਹੀ ॥
antar basay baahar bhee ohee.
He believes that the same God who dwells within is also outside.
ਉਸ ਲਈ ਅੰਦਰ ਬਾਹਰ ਸਭ ਥਾਂ ਉਹੀ ਪ੍ਰਭੂ ਵੱਸਦਾ ਹੈ 
انّترِ بسے باہرِ بھی اۄہی
۔ ہر دل میں وہی بستا ہے دل میں بھی وہ باہر بھی وہ 

 ਨਾਨਕ ਦਰਸਨੁ ਦੇਖਿ ਸਭ ਮੋਹੀ ॥੪॥
naanak darsan daykh sabh mohee. ||4||
O’ Nanak, beholding this all pervading sight of God, the entire world is fascinated. ||4||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਰਬਵਿਆਪੀਦਰਸਨ ਕਰ ਕੇ ਸਾਰੀ ਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀ ਮਸਤ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ l
نانک درسنُ دیکھِ سبھ مۄہی
موہی ۔ محبت میں گرفتار ۔
عارفان کی نگاہ خدا پر اے نانک۔ دیدار سے اس کے سارا عالم محو ہوجاتا ہے

 ਆਪਿ ਸਤਿ ਕੀਆ ਸਭੁ ਸਤਿ ॥
aap sat kee-aa sabh sat.
He Himself is True, and all that He has made is also True and not an illusion.
ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹਸਤੀ ਵਾਲਾ ਹੈਜੋ ਕੁਝ ਉਸ ਨੇ ਪੈਦਾ ਕੀਤਾ ਹੈ ਉਹ ਸਭ ਹੋਂਦ ਵਾਲਾ ਹੈ (ਭਾਵਭਰਮ ਭੁਲੇਖਾ ਨਹੀਂ)
آپِ ستِ کیِیا سبھُ ستِ
ست۔ سچ ۔ صدیوی ۔
سچا ہے آپ خدا اعمال بھی اس کے سچے ہیں

 ਤਿਸੁ ਪ੍ਰਭ ਤੇ ਸਗਲੀ ਉਤਪਤਿ ॥
tis parabh tay saglee utpat.
The entire creation has originated from God.
ਸਾਰੀ ਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀ ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਹੋਈ ਹੈ
تِسُ پ٘ربھ تے سگلی اُتپتِ
اتپت۔ پیدائش۔
۔ اسی خدا نے ساری دنیا ہوئی ہے پیدا

 ਤਿਸੁ ਭਾਵੈ ਤਾ ਕਰੇ ਬਿਸਥਾਰੁ ॥
tis bhaavai taa karay bisthaar.
As it pleases Him, He creates the expanse,
ਜੇ ਉਸ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਹੋਵੇ ਤਾਂ ਜਗਤ ਦਾ ਪਸਾਰਾ ਕਰ ਦੇਂਦਾ ਹੈ,
تِسُ بھاوےَ تا کرے بِستھارُ
دستھار۔ پھیلاؤ ۔
۔ جب چاہتا ہےعالم کو پھیلاتا ہے 

 ਤਿਸੁ ਭਾਵੈ ਤਾ ਏਕੰਕਾਰੁ ॥
tis bhaavai taa aikankaar.
and as it pleases Him, He becomes the One and the only One again.
ਜੇ ਭਾਵੇ ਸੁਤਾਂ ਫਿਰ ਇਕ ਆਪ ਹੀ ਆਪ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
تِسُ بھاوےَ تا ایکنّکارُ
اینکار واحد۔
جب چاہتا ہے واحد رہ جاتا ہے ۔ 

 ਅਨਿਕ ਕਲਾ ਲਖੀ ਨਹ ਜਾਇ ॥
anik kalaa lakhee nah jaa-ay.
Manifold are His powers which cannot be known.
ਉਸ ਦੀਆਂ ਅਨੇਕਾਂ ਤਾਕਤਾਂ ਹਨਕਿਸੇ ਦਾ ਬਿਆਨ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦਾ;
انِک کلا لکھی نہ جاءِ
انک۔ بیشمار۔ کلا۔ طاقت۔لکھی ۔ تحریر ۔ شمار۔
طاقت لا محدود کا مالک کیسے اسے تحریر کریں 

 ਜਿਸੁ ਭਾਵੈ ਤਿਸੁ ਲਏ ਮਿਲਾਇ ॥
jis bhaavai tis la-ay milaa-ay.
He unites with Himself whomsoever He pleases.
ਜਿਸ ਉਤੇ ਤੁੱਠਦਾ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਨਾਲ ਮਿਲਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ
جِسُ بھاوےَ تِسُ لۓ مِلاءِ
جسے چاہتا ہے ساتھ ملاتا ہے ۔ 

 ਕਵਨ ਨਿਕਟਿ ਕਵਨ ਕਹੀਐ ਦੂਰਿ ॥
kavan nikat kavan kahee-ai door.
It cannot be said as to who is He is close to Him and who is far from Him,
ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਕਿਨ੍ਹਾਂ ਤੋਂ ਨੇੜੇਤੇ ਕਿਨ੍ਹਾਂ ਤੋਂ ਦੂਰ ਕਿਹਾ ਜਾ ਸਕਦਾ ਹੈ?
کون نِکٹِ کون کہیِۓَ دۄُرِ
نکٹ۔ نزدیک۔
کسے نزدیک کہیں کسے دور 

 ਆਪੇ ਆਪਿ ਆਪ ਭਰਪੂਰਿ ॥
aapay aap aap bharpoor.
because He Himself is pervading everywhere.
ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਸਭ ਥਾਈਂ ਮੌਜੂਦ ਹੈ
آپے آپِ آپ بھرپۄُرِ
بھر پور ۔ مکمل ۔ کامل۔
کہ اپنے آپ بھی مکمل ہے ۔ ۔ 

 ਅੰਤਰਗਤਿ ਜਿਸੁ ਆਪਿ ਜਨਾਏ ॥
antargat jis aap janaa-ay.
To whom He imparts this understanding of higher spiritual state,
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਅੰਦਰਲੀ ਉੱਚੀ ਅਵਸਥਾ ਸੁਝਾਉਂਦਾ ਹੈ
انّترگتِ جِسُ آپِ جناۓ
انتر گت۔ اندرونی بلند حالت۔ جنائے ۔ سمجھائے ۔
ہر شے میں ہے نور اسکا۔ جس انسان کو اپنی ہستی سمجھاتا ہے 

 ਨਾਨਕ ਤਿਸੁ ਜਨ ਆਪਿ ਬੁਝਾਏ ॥੫॥
naanak tis jan aap bujhaa-ay. ||5||
O’ Nanak, to that person He reveals Himself. ||5||
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ (ਆਪਣੀ ਇਸ ਸਰਬਵਿਆਪਕ ਦੀਸਮਝ ਬਖ਼ਸ਼ਦਾ ਹੈ 
نانک تِسُ جن آپِ بُجھاۓ
۔ اے نانک اسے راز الہٰی آجاتا ہےجسے وہ خود اپنی سمجھ عطا کرتاہے 

 ਸਰਬ ਭੂਤ ਆਪਿ ਵਰਤਾਰਾ ॥
sarab bhoot aap vartaaraa.
He Himself is pervading in all beings,
ਸਾਰੇ ਜੀਵਾਂ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਵਰਤ ਰਿਹਾ ਹੈ,
سرب بھۄُت آپِ ورتارا
سرب۔ سارے ۔ بھوت۔ جاندار۔ ورتار۔ جو برتاؤ ہو رہا ہے ۔
سب جانداروں میں الہٰی نور ہے ۔

 ਸਰਬ ਨੈਨ ਆਪਿ ਪੇਖਨਹਾਰਾ ॥
sarab nain aap paykhanhaaraa.
through all the eyes, He Himself is the beholder.
(ਉਹਨਾਂ ਜੀਵਾਂ ਦੀਆਂਸਾਰੀਆਂ ਅੱਖਾਂ ਵਿਚੋਂ ਦੀ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਵੇਖ ਰਿਹਾ ਹੈ
سرب نیَن آپِ پیکھنہارا
سرب نین ۔ سارے آنکھیں۔ پیکھنہار۔ دیکھنے والا۔
ساری آنکھوں میں ہے خود ہی ہے دیکھ رہا

 ਸਗਲ ਸਮਗ੍ਰੀ ਜਾ ਕਾ ਤਨਾ ॥
sagal samagree jaa kaa tanaa.
All the creation is His Body.
ਸਾਰੀ ਰਚਨਾ ਉਸ ਦੀ ਦੇਹਿ ਹੈ
سگل سمگ٘ری جا کا تنا
سگل سمگری ۔ ساری کائنات ۔ تنا ۔ جسم۔
۔ ساری کائنات اسکا جسم ہے 

 ਆਪਨ ਜਸੁ ਆਪ ਹੀ ਸੁਨਾ ॥
aapan jas aap hee sunaa.
He Himself listens to His Own Praise.
ਉਹ ਆਪਣੀ ਸੋਭਾ ਆਪ ਹੀ ਸੁਣ ਰਿਹਾ ਹੈ
آپن جسُ آپ ہی سُنا
اور اپنی تعریف حمدوہ خود ہی سننے والا ہے ۔ 

 ਆਵਨ ਜਾਨੁ ਇਕੁ ਖੇਲੁ ਬਨਾਇਆ ॥
aavan jaan ik khayl banaa-i-aa.
God has created the drama of birth and death.
ਜੰਮਣਾ ਮਰਨਾ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਇਕ ਖੇਡ ਬਣਾਈ ਹੈ
آون جانُ اِکُ کھیلُ بنائِیا
پیدا ہونا اور موت اسکا ایک کھیل ہے
,

 ਆਗਿਆਕਾਰੀ ਕੀਨੀ ਮਾਇਆ ॥
aagi-aakaaree keenee maa-i-aa.
and He has made Maya subservient to His Will.
ਤੇ ਆਪਣੇ ਹੁਕਮ ਵਿਚ ਤੁਰਨ ਵਾਲੀ ਮਾਇਆ ਬਣਾ ਦਿੱਤੀ ਹੈ
آگِیاکاری کیِنی مائِیا
اگیا کاری ۔ زیر فرمان ۔
۔ زیر فرمان دنیاوی دولت ساری ہے ۔

 ਸਭ ਕੈ ਮਧਿ ਅਲਿਪਤੋ ਰਹੈ ॥
sabh kai maDh alipato rahai.
In the midst of all, He remains unattached.
ਉਹ ਸਭਨਾਂ ਵਿਚ ਵਿਆਪਕ ਹੈ ਪਰ ਫਿਰ ਵੀ ਸਭਨਾਂ ਤੋਂ ਨਿਰਲੇਪ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
سبھ کےَ مدھِ الِپتۄ رہےَ
مدھ ۔ درمیان۔ الپت ۔ بیلاگ۔ بلاتا ثر۔
سب میں بستے ہوئے بیلاگ بلا تاثر ہے وہ ۔ 

 ਜੋ ਕਿਛੁ ਕਹਣਾ ਸੁ ਆਪੇ ਕਹੈ ॥
jo kichh kahnaa so aapay kahai.
Whatever has to be said, He Himself says.
ਉਸ ਨੇ ਜੋ ਕਹਿਣਾ ਹੁੰਦਾ ਹੈਆਪ ਹੀ ਕਹਿ ਦਿੰਦਾ ਹੈ
جۄ کِچھُ کہݨا سُ آپے کہےَ
جو کچھ کہنا ہے خو دہی کہتا ہے وہ 

 ਆਗਿਆ ਆਵੈ ਆਗਿਆ ਜਾਇ ॥
aagi-aa aavai aagi-aa jaa-ay.
By His order, one is born and by His order, one dies.
(ਜੀਵਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੇ ਹੁਕਮ ਵਿਚ ਜੰਮਦਾ ਹੈ ਤੇ ਹੁਕਮ ਵਿਚ ਮਰਦਾ ਹੈ,
آگِیا آوےَ آگِیا جاءِ
۔ الہٰی رضا سے آتا ہے انسان الہٰی رضا سے چلا جاتا ہے ۔

 ਨਾਨਕ ਜਾ ਭਾਵੈ ਤਾ ਲਏ ਸਮਾਇ ॥੬॥
naanak jaa bhaavai taa la-ay samaa-ay. ||6||
O Nanak, when it pleases Him, He absorbs them into Himself. ||6||
ਹੇ ਨਾਨਕਜਦੋਂ ਉਸ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਹੁੰਦੀ ਹੈ ਤਾਂ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਵਿਚ ਲੀਨ ਕਰ ਲੈਂਦਾ ਹੈ l
نانک جا بھاوےَ تا لۓ سماءِ
سمائے ۔ مجذوب کر لیتا ہے ۔
ا ے نانک جس کو چاہتا ہے مجذوب کر لیتا ہے ۔

 ਇਸ ਤੇ ਹੋਇ ਸੁ ਨਾਹੀ ਬੁਰਾ ॥
is tay ho-ay so naahee buraa.
Whatever comes from Him cannot be bad.
ਜੋ ਕੁਝ ਪ੍ਰਭੂ ਵਲੋਂ ਹੁੰਦਾ ਹੈ (ਜੀਆਂ ਲਈਮਾੜਾ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ;
اِس تے ہۄءِ سُ ناہی بُرا
اس کا کیا ہوا کبھی برا نہیں ہو سکتا

 ਓਰੈ ਕਹਹੁ ਕਿਨੈ ਕਛੁ ਕਰਾ ॥
orai kahhu kinai kachh karaa.
Other than Him, who can do anything?
ਤੇ ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਦੱਸੋ ਕਿਸੇ ਨੇ ਕੁਝ ਕਰ ਦਿਖਾਇਆ ਹੈ?
اۄرےَ کہہُ کِنےَ کچھُ کرا ۔
اورے ۔ اس کے بغیر۔ کنے ۔ کس نے ۔ 
اس کے ارادے کے بغیر کوئی کچھ نہیں کر سکتا

 ਆਪਿ ਭਲਾ ਕਰਤੂਤਿ ਅਤਿ ਨੀਕੀ ॥
aap bhalaa kartoot at neekee.
He Himself is good; His actions are the very best.
ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਚੰਗਾ ਹੈਉਸ ਦਾ ਕੰਮ ਭੀ ਚੰਗਾ ਹੈ,
پِ بھلا کرتۄُتِ اتِ نیِکی
بھلا۔ نیک۔ کر توت۔ اعمال۔ ات ۔ نہایت ۔ نیکی ۔ اچھی ۔ 
وہ خود اچھا ہے اس کے سب کام اچھے ہیں

 ਆਪੇ ਜਾਨੈ ਅਪਨੇ ਜੀ ਕੀ ॥
aapay jaanai apnay jee kee.
He alone knows what is in His mind.
ਆਪਣੇ ਦਿਲ ਦੀ ਗੱਲ ਉਹ ਆਪ ਹੀ ਜਾਣਦਾ ਹੈ 
آپے جانےَ اپنے جی کی
جی ۔ دل۔ 
اپنی مرضی وہ خود جانتا ہے

 ਆਪਿ ਸਾਚੁ ਧਾਰੀ ਸਭ ਸਾਚੁ ॥
aap saach Dhaaree sabh saach.
He is Truel, and all that He has established is also True and not an illusion.
ਆਪ ਹਸਤੀ ਵਾਲਾ ਹੈਸਾਰੀ ਰਚਨਾ ਜੋ ਉਸ ਦੇ ਆਸਰੇ ਹੈ,
آپِ ساچُ دھاری سبھ ساچُ
آپ ساچ دھاری سب ساچ
۔ آپ سچاہے ۔ ارادے سچے ہیں۔

 ਓਤਿ ਪੋਤਿ ਆਪਨ ਸੰਗਿ ਰਾਚੁ ॥
ot pot aapan sang raach.
Through and through, He is blended with His creation.
ਰਚਨਾ ਭੀ ਹੋਂਦ ਵਾਲੀ ਹੈ (ਭਰਮ ਨਹੀਂ), ਤਾਣੇ ਪੇਟੇ ਵਾਂਗ ਉਸ ਨੇ ਆਪਣੇ ਨਾਲ ਮਿਲਾਈ ਹੋਈ ਹੈ
اۄتِ پۄتِ آپن سنّگِ راچُ
اور آپس میں تانے پیٹے کی مانند یکسو ہوا ہوا ہے 

 ਤਾ ਕੀ ਗਤਿ ਮਿਤਿ ਕਹੀ ਨ ਜਾਇ ॥
taa kee gat mit kahee na jaa-ay.
His greatness and extent cannot be described.
ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਕਿਹੋ ਜਿਹਾ ਹੈ ਤੇ ਕੇਡਾ ਵੱਡਾ ਹੈਇਹ ਗੱਲ ਬਿਆਨ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦੀ,
تا کی گتِ مِتِ کہی ن جاءِ
۔ اس کی ہستی کا اندازہ ہو نہیں سکتا لا محدود ہے وہ 

 ਦੂਸਰ ਹੋਇ ਤ ਸੋਝੀ ਪਾਇ ॥
doosar ho-ay ta sojhee paa-ay.
 If there were another like Him, only then could one understand Him.
ਕੋਈ ਦੂਜਾ (ਵੱਖਰਾਹੋਵੇ ਤਾਂ ਸਮਝ ਸਕੇ 
دۄُسر ہۄءِ ت سۄجھی پاءِ
اگر اس کے علا وہ کوئی دیگر ہو تو سمجھیں اسے 

 ਤਿਸ ਕਾ ਕੀਆ ਸਭੁ ਪਰਵਾਨੁ ॥
tis kaa kee-aa sabh parvaan.
Everything done by Him must be accepted by all.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਕੀਤਾ ਹੋਇਆ ਸਭ ਕੁਝ (ਜੀਵਾਂ ਨੂੰਸਿਰ ਮੱਥੇ ਮੰਨਣਾ ਪੈਂਦਾ ਹੈ,
تِس کا کیِیا سبھُ پروانُ
۔ جو کچھ کرتا ہے خدا مقبول ہوجاتا ہے ۔ منظو ر ہوجاتا ہے 

 ਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ਨਾਨਕ ਇਹੁ ਜਾਨੁ ॥੭॥
gur parsaad naanak ih jaan. ||7||
O’ Nanak, this is known only through the Guru’s grace. ||7||
 ਹੇ ਨਾਨਕਇਹ ਪਛਾਣ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਆਉਂਦੀ ਹੈ 
گُر پ٘رسادِ نانک اِہُ جانُ
۔ اے انسان اے نانک رحمت مرشد سے کر پہچان

 ਜੋ ਜਾਨੈ ਤਿਸੁ ਸਦਾ ਸੁਖੁ ਹੋਇ ॥
jo jaanai tis sadaa sukh ho-ay.
One who realizes Him, receives everlasting peace.
ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਨਾਲ ਸਾਂਝ ਪਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ ਸਦਾ ਸੁਖ ਹੁੰਦਾ ਹੈ,
جۄ جانےَ تِسُ سدا سُکھُ ہۄءِ
جسکا خدا سے رشتہ پیدا ہوجاتا ہے ہمیشہ آرام و آسائش پاتا ہے ۔

 ਆਪਿ ਮਿਲਾਇ ਲਏ ਪ੍ਰਭੁ ਸੋਇ ॥
aap milaa-ay la-ay parabh so-ay.
God unites that person with Himself.
ਪ੍ਰਭੂ ਉਸ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਨਾਲ ਆਪ ਮਿਲਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ
آپِ مِلاءِ لۓ پ٘ربھُ سۄءِ
خدا اسے مجزوب کر لیتا ہے

 ਓਹੁ ਧਨਵੰਤੁ ਕੁਲਵੰਤੁ ਪਤਿਵੰਤੁ ॥ 
oh Dhanvant kulvant pativant.
That person is spritually wealthy, of noble family and honorable,
ਉਹ ਧਨ ਵਾਲਾਕੁਲ ਵਾਲਾ ਤੇ ਇੱਜ਼ਤ ਵਾਲਾ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
اۄہُ دھنونّتُ کُلونّتُ پتِونّتُ
اوہ ۔ وہ ۔ دھنونت۔ دولتمند۔ کلونت ۔ نیک خاندان ۔ پتونت ۔ با عزت ۔ باوقار
وہ دولتمند نیک خاندان ، با عزت با وقار ہوجاتا ہے ۔ 

 ਜੀਵਨ ਮੁਕਤਿ ਜਿਸੁ ਰਿਦੈ ਭਗਵੰਤੁ ॥
jeevan mukat jis ridai bhagvant.
in whose heart God dwells becomes free from the cycle of birth and death while still alive.
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਭਗਵਾਨ ਵੱਸਦਾ ਹੈਉਹ ਮਨੁੱਖ ਜੀਊਂਦਾ ਹੀ ਮੁਕਤ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
جیِون مُکتِ جِسُ رِدےَ بھگونّتُ
جیون مکت۔ دوڑان۔ حیات ذہنی غلای و دنیاوی غلامیوں سے آزاد۔
جس کے دل میں خدا بس جائے وہ دوران حیات ہی ذہنی و دنیاوی غلامیوں سے آزاد ہوجاتا ہے

 ਧੰਨੁ ਧੰਨੁ ਧੰਨੁ ਜਨੁ ਆਇਆ ॥
Dhan Dhan Dhan jan aa-i-aa.
Totally blessed is the advent of such a human being in the world,
ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਦਾ (ਜਗਤ ਵਿਚਆਉਣਾ ਮੁਬਾਰਿਕ ਹੈ,
دھنّنُ دھنّنُ دھنّنُ جنُ آئِیا
مبارکباد ہے ایسے انسان کے اس دنیا میں جنم لینے پر