Urdu-Page-293

ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਪ੍ਰਭਿ ਆਪਹਿ ਮੇਲੇ ॥੪॥
naanak har parabh aapeh maylay. ||4||
O’ Nanak, God has Himself united them with Him.||4||
 ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ (ਆਪਣੇ ਨਾਲਮਿਲਾ ਲਿਆ ਹੈ l 
نانک ہرِ پ٘ربھِ آپہِ میلے
۔ نانک۔ ایسے خادم کو وصل خدا کا ملتا ہے 

 ਸਾਧਸੰਗਿ ਮਿਲਿ ਕਰਹੁ ਅਨੰਦ ॥ 
saaDh sang mil karahu anand. 
Join the Company of the Saints, and enjoy the true bliss.
ਸਤਸੰਗ ਵਿਚ ਮਿਲ ਕੇ ਇਹ (ਆਤਮਕਅਨੰਦ ਮਾਣਹੁ 
سادھسنّگِ مِلِ کرہُ اننّد
صحبت پاکدامن سے حاسل کرو سکون ۔ انند۔ کوشی ۔ سرور
او ر خدا خود اسکا وصل دینا چاہتا ہے ۔

 ਗੁਨ ਗਾਵਹੁ ਪ੍ਰਭ ਪਰਮਾਨੰਦ ॥
 gun gaavhu parabh parmaanand.
Sing the praises of God, the embodiment of supreme bliss.
ਪਰਮ ਖ਼ੁਸ਼ੀਆਂ ਵਾਲੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਕਰੋ l 
گُن گاوہُ پ٘ربھ پرماننّد
۔ پر مانند۔ جسے سے بلند خوشی حاصل ہے 
صحبت پاکدامن پاکر حاصل کرؤ خوشی۔ 

 ਰਾਮ ਨਾਮ ਤਤੁ ਕਰਹੁ ਬੀਚਾਰੁ ॥
raam naam tat karahu beechaar.
Contemplate on the essence of God’s Name,
ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਦੇ ਭੇਤ ਨੂੰ ਵਿਚਾਰਹੁ
رام نام تتُ کرہُ بیِچارُ
۔ تت۔ اصل۔ حقیقت ۔ 
ایک حقیقت اس کی کرؤ ویچار

 ਦ੍ਰੁਲਭ ਦੇਹ ਕਾ ਕਰਹੁ ਉਧਾਰੁ ॥
darulabh dayh kaa karahu uDhaar.
and redeem this human body, so difficult to obtain.
ਤੇ ਇਸ ਮਨੁੱਖਾ– ਸਰੀਰ ਦਾ ਬਚਾਉ ਕਰੋ ਜੋ ਬੜੀ ਮੁਸ਼ਕਿਲ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
د٘رُلبھ دیہ کا کرہُ اُدھارُ
۔ ادھار۔ بچاؤ
صحبت پاکدامن پاکر حاصل کرؤ خوشی۔ حمدوثناہ کرؤ بھاری خوشیاں والے کی ۔ الہٰی نام ہے ۔ ایک حقیقت اس کی کرؤ ویچار ۔ نایاب ملتی ہے ۔ زندگی اس کو خوب سنوارو آپ 

 ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਬਚਨ ਹਰਿ ਕੇ ਗੁਨ ਗਾਉ ॥
amrit bachan har kay gun gaa-o.
Recite with reverence the ambrosial hymns of God’s Praises;
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੇ ਗੁਣ ਗਾਉ ਜੋ ਅਮਰ ਕਰਨ ਵਾਲੇ ਬਚਨ ਹਨ,
انّم٘رِت بچن ہرِ کے گُن گاءُ
۔ انمرت بچن۔ زندگی عنایت کرنے والا کلام ۔ سنوارنے والا کلام۔
۔ الہٰی حمدوثناہ سے ملتی ہے زندگی یہ ہے آبحیات کا خدا 

 ਪ੍ਰਾਨ ਤਰਨ ਕਾ ਇਹੈ ਸੁਆਉ ॥
paraan taran kaa ihai su-aa-o.
this is the only way to save your life from vices.
ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਨੂੰ (ਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂਬਚਾਉਣ ਦਾ ਇਹੀ ਵਸੀਲਾ ਹੈ
پ٘ران ترن کا اِہےَ سُیاءُ
پران ترن۔ زندگی کامیابی ۔سواؤ۔ ذریعہ ۔ وسیلہ ۔ طریقہ ۔ 
۔ زندگی کامیاب بنانیکا یہی طریقہ اور یہی سلیقہ ہے 

 ਆਠ ਪਹਰ ਪ੍ਰਭ ਪੇਖਹੁ ਨੇਰਾ ॥
aath pahar parabh paykhahu nayraa.
Feel the presence of God within you, twenty-four hours a day.
ਅੱਠੇ ਪਹਰ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਅੰਗਸੰਗ ਵੇਖਹੁ,
آٹھ پہر پ٘ربھ پیکھہُ نیرا
پیکھو ۔ دیکھو ۔ تیرا ۔ نزدیک۔ ساتھ۔
۔ ہر دم خدا کو ساتھی سمجھو 

 ਮਿਟੈ ਅਗਿਆਨੁ ਬਿਨਸੈ ਅੰਧੇਰਾ ॥
mitai agi-aan binsai anDhayraa.
your ignorance shall depart, and darkness of Maya shall be dispelled.
 ਅਗਿਆਨਤਾ ਮਿਟ ਜਾਏਗੀ ਤੇ ਮਾਇਆ ਵਾਲਾ ਹਨੇਰਾ ਨਾਸ ਹੋ ਜਾਏਗਾ l
مِٹےَ اگِیانُ بِنسےَ انّدھیرا
اگیان۔ جہالت۔ لا علمی ۔
۔ اس سے جہالت جاتی ہے اور نا سم مجھی کا اندھیرا کا نور ہو جاتاہے

 ਸੁਨਿ ਉਪਦੇਸੁ ਹਿਰਦੈ ਬਸਾਵਹੁ ॥ 
sun updays hirdai basaavhu.
Listen to the Guru’s teachings and enshrine them in your heart,

 ਸਤਿਗੁਰੂ ਦਾ ਉਪਦੇਸ਼ ਸੁਣ ਕੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਵਸਾਉ
سُنِ اُپدیسُ ہِردےَ بساوہُ
اپدیس ۔ نصیحت ۔ سبق ۔ ہدایت۔ ہر دے بسا د ہو ۔ ذہن نشین کرؤ
۔ واعظ سنو اور دل میں بساؤ 

 ਮਨ ਇਛੇ ਨਾਨਕ ਫਲ ਪਾਵਹੁ ॥੫॥
 man ichhay nanak fal paavhu. ||5||
O’ Nanak, all your desires shall be fulfilled. ||5||
ਹੇ ਨਾਨਕਮਨਮੰਗੀਆਂ ਮੁਰਾਦਾਂ ਮਿਲਣਗੀਆਂ l
من ا ہُ ِچھے نانک پھل پاو
۔ اچھے ۔ خواہش
اس سے اے نانک۔ دل کی خواہش کے پھل پاؤ گے ۔ 

 ਹਲਤੁ ਪਲਤੁ ਦੁਇ ਲੇਹੁ ਸਵਾਰਿ ॥
halat palat du-ay layho savaar.
Embellish both this world and the next,
ਲੋਕ ਤੇ ਪਰਲੋਕ ਦੋਵੇਂ ਸੁਧਾਰ ਲਵੋ
ہلتُ پلتُ دُءِ لیہُ سوارِ
ہلت پلت۔ دونوں عالموں میں زندگی کا موجودہ دور مییں او ر موت کے بعد کی زندگی ۔
عالم الہٰی میں بس کر دونوں عالم سنوار جاتے ہیں 

 ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਅੰਤਰਿ ਉਰਿ ਧਾਰਿ ॥
raam naam antar ur Dhaar.
by enshrining God’s Name deep within your heart.
ਸੁਆਮੀ ਦੇ ਨਾਮ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਅੰਦਰ ਟਿਕਾਉਣ ਦੁਆਰਾ
رام نامُ انّترِ اُرِ دھارِ
انتر اردھار۔ ذہن نشین کرکے ۔ دلمیں بسا کر

 ਪੂਰੇ ਗੁਰ ਕੀ ਪੂਰੀ ਦੀਖਿਆ ॥
pooray gur kee pooree deekhi-aa.
Perfect is the Teaching of the Perfect Guru.
ਪੂਰੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਸਿੱਖਿਆ ਭੀ ਪੂਰਨ (ਭਾਵਮੁਕੰਮਲਹੁੰਦੀ ਹੈ l
پۄُرے گُر کی پۄُری دیِکھِیا
۔ پورے گر ۔ کامل مرشد ۔ پوری دیکھیا۔ کامل سبق۔ کامل نصیحت
۔ کامل مرشد کا سبق مکمل ہوتا ہے

 ਜਿਸੁ ਮਨਿ ਬਸੈ ਤਿਸੁ ਸਾਚੁ ਪਰੀਖਿਆ ॥
jis man basai tis saach pareekhi-aa.
The person in whose heart it dwells, realizes the eternal God
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ (ਇਹ ਸਿੱਖਿਆਵੱਸਦੀ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ ਸਦਾਥਿਰ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਪ੍ਰਭੂ ਸਮਝ  ਜਾਂਦਾ ਹੈ
جِسُ منِ بسےَ تِسُ ساچُ پریِکھِیا
۔ ساچ پریکھیا۔ پرکھ ۔ حقیقت کی سمجھ ۔
۔ جس کے دل میں بس جائے سچا امتحان اسکا سچی سمجھ ہوجاتی ہے 

 ਮਨਿ ਤਨਿ ਨਾਮੁ ਜਪਹੁ ਲਿਵ ਲਾਇ ॥
man tan naam japahu liv laa-ay.
With your mind and body, recite the Naam lovingly and attune yourself to it.
ਮਨ ਤੇ ਸਰੀਰ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਲਿਵ ਜੋੜ ਕੇ ਨਾਮ ਜਪਹੁ l 
منِ تنِ نامُ جپہُ لِو لاءِ
۔ دل وجان سے یاد کرؤ خدا کو 

 ਦੂਖੁ ਦਰਦੁ ਮਨ ਤੇ ਭਉ ਜਾਇ ॥
dookh darad man tay bha-o jaa-ay.
Sorrow, pain and fear from the mind shall depart.
ਦੁਖ ਦਰਦ ਅਤੇ ਮਨ ਤੋਂ ਡਰ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਏਗਾ l
دۄُکھُ دردُ من تے بھءُ جاءِ
بھو۔ خوف
عذاب اور خوف مٹ جاتا ہے 

 ਸਚੁ ਵਾਪਾਰੁ ਕਰਹੁ ਵਾਪਾਰੀ ॥
sach vaapaar karahu vaapaaree.
O’ mortal, do the true trade of meditating on God’s Name,
ਹੇ ਵਣਜਾਰੇ ਜੀਵਸੱਚਾ ਵਣਜ ਕਰਹੁ,
سچُ واپارُ کرہُ واپاری
۔ سچ واپار۔ چونکہ زندگی ایک نایاب اور قیمتی شے ہے اس لئے اسکا سچا اور سچی زندگی کو نہایت پاک بناو
۔ اے زندگی کے سوداگرو زندگی کا سچا سودا کرؤ 

 ਦਰਗਹ ਨਿਬਹੈ ਖੇਪ ਤੁਮਾਰੀ ॥
dargeh nibhai khayp tumaaree.
so that the merchandise (wealth of Naam) is duly approved in God’s court.
(ਨਾਮ ਰੂਪ ਸੱਚੇ ਵਣਜ ਨਾਲਤੁਹਾਡਾ ਸੌਦਾ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਦਰਗਾਹ ਵਿਚ ਮੁੱਲ ਪਾਏਗਾ 
درگہ نِبہےَ کھیپ تُماری
۔ درگیہہ۔ دربار الہٰی ۔ کھیپ ۔ سودا ۔ تھہے ۔ قبول ہوجائے ۔ پایہ تکمیل تک پہن جائے
جس سے بارگاہ الہٰی میں زندگی کے اس مقصد کی قدرو منزلت حاصل ہو 

 ਏਕਾ ਟੇਕ ਰਖਹੁ ਮਨ ਮਾਹਿ ॥
aykaa tayk rakhahu man maahi.
Keep in mind, the real support of God,
ਮਨ ਵਿਚ ਇਕ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦਾ ਆਸਰਾ ਰੱਖੋ,
ایکا ٹیک رکھہُ من ماہِ
۔ ایکا۔ واحد۔ ٹیک۔ آسرا۔
دل میں واحد خدا کا آسرا لو ۔ 

 ਨਾਨਕ ਬਹੁਰਿ ਨ ਆਵਹਿ ਜਾਹਿ ॥੬॥
nanak bahur na aavahi jaahi. ||6||
O’ Nanak, you shall be free from the cycles of birth and death.|6||
ਹੇ ਨਾਨਕਮੁੜ ਜੰਮਣ ਮਰਨ ਦਾ ਗੇੜ ਨਹੀਂ ਹੋਵੇਗਾ l
نانک بہُرِ ن آوہِ جاہِ
بہورنہ اویہہ جاہے ۔ تناسخ میں نہ رہو۔
نانک تاکہ تمہارے تناسخ مٹ جائے ۔ 

 ਤਿਸ ਤੇ ਦੂਰਿ ਕਹਾ ਕੋ ਜਾਇ ॥
tis tay door kahaa ko jaa-ay.
Where can anyone go, to get away from Him?
ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਪਰੇ ਕਿੱਥੇ ਕੋਈ ਜੀਵ ਜਾ ਸਕਦਾ ਹੈ?
تِس تے دۄُرِ کہا کۄ جاءِ
تس تے ۔ اس سے مراد خدا۔ کہا ۔ کہاں۔ کو ۔ کوئی 
خدا کا در چھوڑ کر اے انسان کہاں تم جاؤ گے 

 ਉਬਰੈ ਰਾਖਨਹਾਰੁ ਧਿਆਇ ॥
ubrai raakhanhaar Dhi-aa-ay.
One is saved only by meditating on the Protector God.
ਜੀਵ ਬਚਦਾ ਹੀ ਰੱਖਣਹਾਰ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਿਮਰ ਕੇ ਹੈ
اُبرےَ راکھنہارُ دھِیاءِ
۔ ابھرے ۔ بچتا ہے ۔ راکھنہار ۔ رکھنے والا۔ دھایئے ۔ یاد کرنے سے 
بچو گے تبھی جب بچانےوالے میں دھیان لگاؤ گے ۔ 

 ਨਿਰਭਉ ਜਪੈ ਸਗਲ ਭਉ ਮਿਟੈ ॥
nirbha-o japai sagal bha-o mitai.
Meditating on the Fearless God, all fear departs,
ਜੋ ਮੁਨੱਖ ਨਿਰਭਉ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਨੂੰ ਜਪਦਾ ਹੈਉਸ ਦਾ ਸਾਰਾ ਡਰ ਮਿਟ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
نِربھءُ جپےَ سگل بھءُ مِٹےَ
۔ نربھو۔ بیخوف۔ سگل۔بھو۔ سارے خوف 
بیخوف الہٰی یاد سے سب خوف دور ہوجاتے ہیں۔ 

 ਪ੍ਰਭ ਕਿਰਪਾ ਤੇ ਪ੍ਰਾਣੀ ਛੁਟੈ ॥
parabh kirpaa tay paraanee chhutai.
(because) by God’s Grace alone, the mortal is released from all fear.
(ਕਿਉਂਕਿਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਮੇਹਰ ਨਾਲ ਹੀ ਬੰਦਾ (ਡਰ ਤੋਂਖ਼ਲਾਸੀ ਪਾਂਦਾ ਹੈ
پ٘ربھ کِرپا تے پ٘راݨی چھُٹےَ
۔ پرائی ۔ انسان۔ 
رحمت خدا سے انسان ذہنی غلامی سے نجات پاتے ہیں۔ 

 ਜਿਸੁ ਪ੍ਰਭੁ ਰਾਖੈ ਤਿਸੁ ਨਾਹੀ ਦੂਖ ॥
jis parabh raakhai tis naahee dookh.
One who is protected by God never suffers in any sorrow.
ਜਿਸ ਬੰਦੇ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਰੱਖਦਾ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ ਕੋਈ ਦੁੱਖ ਨਹੀਂ ਪੋਂਹਦਾ,
جِسُ پ٘ربھُ راکھےَ تِسُ ناہی دۄُکھ
جس کا خدا خود محافظ ہواسے عذاب کب آتا ہے 

 ਨਾਮੁ ਜਪਤ ਮਨਿ ਹੋਵਤ ਸੂਖ ॥
naam japat man hovat sookh.
By meditating on Naam with love and devotion, the mind becomes peaceful.
ਨਾਮ ਜਪਿਆਂ ਮਨ ਵਿਚ ਸੁਖ ਪੈਦਾ ਹੁੰਦਾ ਹੈ
نامُ جپت منِ ہۄوت سۄُکھ
نام خدا کے جپنے سے انسان آسائش پاتا ہے ۔ 

 ਚਿੰਤਾ ਜਾਇ ਮਿਟੈ ਅਹੰਕਾਰੁ ॥
chintaa jaa-ay mitai ahaNkaar.
Anxiety departs, and ego is eliminated.
ਚਿੰਤਾ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈਅਹੰਕਾਰ ਮਿਟ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
چِنّتا جاءِ مِٹےَ اہنّکارُ
اہنکار ۔ تکبر۔ غرور۔
ہوتا ہے دور تکبر فکر ختم ہوجاتے ہیں۔ 

 ਤਿਸੁ ਜਨ ਕਉ ਕੋਇ ਨ ਪਹੁਚਨਹਾਰੁ ॥
tis jan ka-o ko-ay na pahuchanhaar.
No one can compare himself with that devotee of God.
ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਦੀ ਕੋਈ ਬਰਾਬਰੀ ਹੀ ਨਹੀਂ ਕਰ ਸਕਦਾ
تِسُ جن کءُ کۄءِ ن پہُچنہارُ
بپہچا۔ برا بر۔
رتبہ نہیں برابر اس کے کسی کا وہ سردار ہوجاتے ہیں 
 

 ਸਿਰ ਊਪਰਿ ਠਾਢਾ ਗੁਰੁ ਸੂਰਾ ॥
sir oopar thaadhaa gur sooraa.
The one who is protected by the all powerful God,
ਜਿਸ ਬੰਦੇ ਦੇ ਸਿਰ ਉਤੇ ਸੂਰਮਾ ਸਤਿਗੁਰੂ (ਰਾਖਾਖਲੋਤਾ ਹੋਇਆ ਹੈ, 
سِر اۄُپرِ ٹھاڈھا گُرُ سۄُرا
ٹھاڈا۔ کھڑا۔ گر سور۔ بہادر مرشد۔
جس کے سر پر سایہ ہو مرشد و یر بہادر کا 

 ਨਾਨਕ ਤਾ ਕੇ ਕਾਰਜ ਪੂਰਾ ॥੭॥
naanak taa kay kaaraj pooraa. ||7||
O’ Nanak, all his tasks are accomplished.||7||
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਦੇ ਸਾਰੇ ਕੰਮ ਰਾਸ  ਜਾਂਦੇ ਹਨ 
نانک تا کے کارج پۄُرا
اے نانک۔ کام ہونگے سب پورے اس کے حاصل مقصد ہوگا۔ 

 ਮਤਿ ਪੂਰੀ ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਜਾ ਕੀ ਦ੍ਰਿਸਟਿ ॥
mat pooree amrit jaa kee darisat.
God, whose wisdom is perfect, and whose glance is ambrosial,
ਜਿਸ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਮਝ ਪੂਰਨ (ਅਭੁੱਲਹੈਜਿਸ ਦੀ ਨਜ਼ਰ ਵਿਚੋਂ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਵਰਸਦਾ ਹੈ,
متِ پۄُری انّم٘رِتُ جا کی د٘رِسٹِ
مت۔ عقل۔ سمجھ۔ درشٹ۔ نظریہ۔ نگاہ۔ انمرت۔ آب حیات۔ زندگی کو پاک بنانے والا پانی ۔
کامل عقل شفقت بھرا نظریہ اور نقطہ نگاہ

 ਦਰਸਨੁ ਪੇਖਤ ਉਧਰਤ ਸ੍ਰਿਸਟਿ ॥
darsan paykhat uDhrat sarisat.
beholding His Vision (acquiring His Virtues), the world is saved.
ਉਸ ਦਾ ਦੀਦਾਰ ਕੀਤਿਆਂ ਜਗਤ ਦਾ ਉੱਧਾਰ ਹੁੰਦਾ ਹੈ
درسنُ پیکھت اُدھرت س٘رِسٹِ
درشن۔ دیدار۔ پیکھت ۔ دیکھنے سے ۔ سر شٹ۔ عالم ۔ دنیا ۔ جہان ۔ ادھرت۔ بچاؤ۔ سہارا ۔
جس کے دیدار سے عالم بچ جاتا ہے جسکا عالم کو سہارا ہے ۔ 

 ਚਰਨ ਕਮਲ ਜਾ ਕੇ ਅਨੂਪ ॥
charan kamal jaa kay anoop.
God, whose virtues are incomparably great,
ਜਿਸ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਕਮਲਾਂ (ਵਰਗੇਅੱਤ ਸੋਹਣੇ ਚਰਨ ਹਨ
چرن کمل جا کے انۄُپ
انوپ ۔ انوکھے نراے ۔
جس کے پاؤں نرالے اور انوکھے ہیں
, 

 ਸਫਲ ਦਰਸਨੁ ਸੁੰਦਰ ਹਰਿ ਰੂਪ ॥
safal darsan sundar har roop.
beauteous is His Form and most rewarding is His sight.
ਉਸ ਦਾ ਰੂਪ ਸੁੰਦਰ ਹੈਤੇਉਸ ਦਾ ਦੀਦਾਰ ਮੁਰਾਦਾਂ ਪੂਰੀਆਂ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈ
سپھل درسنُ سُنّدر ہرِ رۄُپ
سپھل۔ ہرآور ۔ پھل دینے والے ۔ سندر۔ خوبصورت ۔ روپ شکل۔
۔ کنول جیسے پاک ہیں دیدار برآور خدا کی شکل وصورت ہے 

 ਧੰਨੁ ਸੇਵਾ ਸੇਵਕੁ ਪਰਵਾਨੁ ॥
Dhan sayvaa sayvak parvaan.
Blessed is his devotion, and acceptable is that devotee in God’s court.
ਉਸ ਦਾ ਸੇਵਕ (ਦਰਗਾਹ ਵਿਚਕਬੂਲ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ (ਤਾਹੀਏਂਉਸ ਦੀ ਸੇਵਾ ਮੁਬਾਰਿਕ ਹੈ,
دھنّنُ سیوا سیوکُ پروانُ
دھن۔ شاباش۔ مبار ک۔ سیوا۔ خدمت۔ سیوک۔ خدمتگار
۔ ذہنی راز سے ہے واقف اور سب کا رہبر ہے ۔ 

 ਅੰਤਰਜਾਮੀ ਪੁਰਖੁ ਪ੍ਰਧਾਨੁ ॥
antarjaamee purakh parDhaan.
God, the inner-knower is the most exalted Supreme Being.
ਉਹ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਘਟ ਘਟ ਦੀ ਜਾਣਨ ਵਾਲਾ ਤੇ ਸਭ ਤੋਂ ਵੱਡਾ ਹੈ 
انّترجامی پُرکھُ پ٘ردھانُ
۔ انتر جامی ۔ اندرونی راز جاننے والا۔ پرکھ۔ انسان۔ پر دھان۔ مقبول۔
وہ دلوں کے بھید جاننے والامقبول بھی ہے 

 ਜਿਸੁ ਮਨਿ ਬਸੈ ਸੁ ਹੋਤ ਨਿਹਾਲੁ ॥
jis man basai so hot nihaal.
The one, within whose mind God dwells, becomes blissfully happy.
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ (ਐਸਾ ਪ੍ਰਭੂਵੱਸਦਾ ਹੈ ਉਹ (ਫੁੱਲ ਵਾਂਗਖਿੜ ਆਉਂਦਾ ਹੈ,
جِسُ منِ بسےَ سُ ہۄت نِہالُ
نہال خوش
جس کے دل میں بساجاتا ہے وہ خوشیاں پاتا ہے 

 ਤਾ ਕੈ ਨਿਕਟਿ ਨ ਆਵਤ ਕਾਲੁ ॥
taa kai nikat na aavat kaal.
The fear of death does not draw near him.
ਮੌਤ ਦਾ ਡਰ ਉਸ ਨੂੰ ਪੋਂਹਦਾ ਨਹੀਂ
تا کےَ نِکٹِ ن آوت کالُ
۔ نکٹ۔ نزدیک۔ کال۔موت۔
۔ روحانی موت اس کے نزدیک نہ پھٹکے 

 ਅਮਰ ਭਏ ਅਮਰਾ ਪਦੁ ਪਾਇਆ ॥ 
amar bha-ay amraa pad paa-i-aa. 
They have become immortal, and have received an immortal status,
 ਉਹ ਜਨਮ ਮਰਨ ਤੋਂ ਰਹਿਤ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨਤੇ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਦਰਜਾ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲੈਂਦੇ ਹਨ l
امر بھۓ امرا پدُ پائِیا
امر۔ صدیوی ۔ پد ۔ رتبہ۔ درجہ ۔
صدیوی وہ ہوجاتا ہےاور صدیوی رتبہ پاتا ہے 


ਸਾਧਸੰਗਿ ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਧਿਆਇਆ ॥੮॥੨੨॥ 
saaDhsang naanak har Dhi-aa-i-aa. ||8||22||
O’ Nanak, by meditating on God in the holy congregation. ||8||22||

 ਹੇ ਨਾਨਕਜਿਨ੍ਹਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਨੇ ਸਤਸੰਗ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਿਮਰਿਆ ਹੈ l
سادھسنّگِ نانک ہرِ دھِیائِیا
سادھ سنگ۔ پاکدامن کے ساتھ دھیائیا۔ یاد کیا۔
۔ اے نانک جو پاکداموں عارفوں ک صحبت میں یاد خدا کرتے ہیں۔ 

 ਸਲੋਕੁ ॥
salok.
Shalok:
سلۄک
 ਗਿਆਨ ਅੰਜਨੁ ਗੁਰਿ ਦੀਆ ਅਗਿਆਨ ਅੰਧੇਰ ਬਿਨਾਸੁ ॥
gi-aan anjan gur dee-aa agi-aan anDhayr binaas.
When the Guru blesses one with ointment of Divine wisdom, the darkness of his ignorance is dispelled.
(ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰਸਤਿਗੁਰੂ ਨੇ ਗਿਆਨ ਦਾ ਸੁਰਮਾ ਬਖ਼ਸ਼ਿਆ ਹੈਉਸ ਦੇ ਅਗਿਆਨ (ਰੂਪਹਨੇਰੇ ਦਾ ਨਾਸ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
گِیان انّجنُ گُرِ دیِیا اگِیان انّدھیر بِناسُ
گیان۔ علم ۔ انجن۔ سرمہ ۔ گر۔ مرشد ۔ اگیان۔ لا علمی ۔ جہالت۔ وناس۔ مٹانا۔
مرشد جسے علم کا سرمہ عنایت کرتا ہے ۔ لا علمی اور جہالت کا اندھیرا کا فور ہوجاتا ہے ۔

 ਹਰਿ ਕਿਰਪਾ ਤੇ ਸੰਤ ਭੇਟਿਆ ਨਾਨਕ ਮਨਿ ਪਰਗਾਸੁ ॥੧॥
har kirpaa tay sant bhayti-aa naanak man pargaas. ||1||
O’ Nanak, by God’s Grace, when one meets with the true Guru, his mind gets enlightened by divine knowledge ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਜੋ ਮਨੁੱਖਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੀ ਮੇਹਰ ਨਾਲ ਗੁਰੂ ਨੂੰ ਮਿਲਿਆ ਹੈਉਸ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ (ਗਿਆਨ ਦਾਚਾਨਣ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ l 
ہرِ کِرپا تے سنّت بھیٹِیا نانک منِ پرگاسُ 
ہر ۔ خدا۔ کرپا۔ مہربانی ۔ شفقت۔ بھیٹیا ۔ ملاپ ہوا۔ پر گاس۔ روشن۔
الہٰی عنایت و شفقت سے خدا رسیدہ ہے سے ملاپ ہوا۔ اے نانک من اور ذہن روشن ہوا۔

 ਅਸਟਪਦੀ ॥
ashtapadee.
Ashtapadee:
اسٹپدی
 ਸੰਤਸੰਗਿ ਅੰਤਰਿ ਪ੍ਰਭੁ ਡੀਠਾ ॥
satsang antar parabh deethaa.
In the Holy Congregation, One who has realized God within the self,
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ ਰਹਿ ਕੇ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਵੇਖਿਆ ਹੈ,
سنّت سنّگِ انّترِ پ٘ربھُ ڈیِٹھا
سنت سنگ ۔ صحبت عارفان ۔ انتر۔ دل میں۔ پربھ ۔ خدا۔ ڈیٹھا۔ دیدار کیا
صحبت عارفان سے دیدار الہٰی پایا

 ਨਾਮੁ ਪ੍ਰਭੂ ਕਾ ਲਾਗਾ ਮੀਠਾ ॥
naam parabhoo kaa laagaa meethaa
starts adoring God’s Name.
ਉਸ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਪਿਆਰਾ ਲੱਗਣ ਲੱਗ ਪੈਂਦਾ ਹੈ
نامُ پ٘ربھۄُ کا لاگا میِٹھا
پربھ ۔ خدا ۔
اپنے ہی دل میں اور نام الہٰی دل کو بھائیا ۔ 

 ਸਗਲ ਸਮਿਗ੍ਰੀ ਏਕਸੁ ਘਟ ਮਾਹਿ ॥
sagal samagri aykas ghat maahi.
This person sees everything of the world contained in God Almighty,
ਜਗਤ ਦੇ ਸਾਰੇ ਪਦਾਰਥ ਉਸ ਨੂੰ ਇਕ ਪ੍ਰਭੂ ਵਿਚ ਹੀ ਲੀਨ ਦਿੱਸਦੇ ਹਨ,
سگل سمِگ٘ری ایکسُ گھٹ ماہِ
سگل۔ ساری۔ سمگری ۔ کائنات عالم ۔ ایکس گھٹ ماہے ۔ واحد خدا میں ۔ ڈیٹھا۔ دیدار کیا
کائنات ساری ہے اس وحدت کے اندر

 ਅਨਿਕ ਰੰਗ ਨਾਨਾ ਦ੍ਰਿਸਟਾਹਿ ॥
anik rang naanaa daristaahi.
and countless phenomena of different colors and forms emanating from Him.
(ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਹੀਅਨੇਕਾਂ ਕਿਸਮਾਂ ਦੇ ਰੰਗ ਤਮਾਸ਼ੇ (ਨਿਕਲੇ ਹੋਏਦਿੱਸਦੇ ਹਨ 
انِک رنّگ نانا د٘رِسٹاہِ
انک رنگ ۔ بیشمار حالتوں میں۔ نانا درسٹا ہے ۔ علیحد ہ علیحدہ کئی طرح سے دکھائی دیتے ہیں۔
بیشمار رنگوں اور نظاروں میں علیحد ہ علیحدہ کئی طرح سے دکھائی دیتے ہیں

 ਨਉ ਨਿਧਿ ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਪ੍ਰਭ ਕਾ ਨਾਮੁ ॥ 
na-o niDh amrit parabh kaa naam.
God’s ambrosial Name is like the nine treasures of the world,
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਜੋ (ਮਾਨੋਜਗਤ ਦੇਨੌ ਹੀ ਖ਼ਜ਼ਾਨਿਆਂ (ਦੇ ਤੁੱਲਹੈ ਤੇ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਹੈ;
نءُ نِدھِ انّم٘رِتُ پ٘ربھ کا نامُ
نوندھ۔ نو خزانے ۔ انمرت ۔ آب حیات۔ پربھ۔ خدا۔
۔ نو خزانے اور آب حیات ہے نام الہٰی۔

 ਦੇਹੀ ਮਹਿ ਇਸ ਕਾ ਬਿਸ੍ਰਾਮੁ ॥
dayhee meh is kaa bisraam.
and It dwells in the human body itself.
 
ਮਨੁੱਖਾ ਸ਼ਰੀਰ ਅੰਦਰ ਹੀ ਇਸਦਾ ਟਿਕਾਣਾ ਹੈ
دیہی مہِ اِس کا بِس٘رامُ
۔ وسرام۔ ٹھکانہ ۔
جو جسم انسانی میں بستا ہے ۔ او ر ٹھکانہ ہے 

 ਸੁੰਨ ਸਮਾਧਿ ਅਨਹਤ ਤਹ ਨਾਦ ॥
sunn samaaDh anhat tah naad.
In the state of deepest meditation, the non-stop celestial music keeps playing.
ਓਥੇ ਅਫੁਰ ਸਿਮਰਨ ਅਤੇ ਬੈਕੁੰਠੀ ਕੀਰਤਨ ਦੀ ਧੁਨੀ ਸ਼ੋਭਦੀ ਹੈ
سُنّن سمادھِ انہت تہ ناد
سن سمادھ ۔ بے حس۔ حرکت دھیان۔ آحت۔ آواز۔ انحت بے آواز۔ لگاتار۔ تیہہ۔ وہ ۔
۔ بے حس و حرکت بغیر خیالوں کو بے آواز ہے اس کی 

 ਕਹਨੁ ਨ ਜਾਈ ਅਚਰਜ ਬਿਸਮਾਦ ॥
kahan na jaa-ee achraj bismaad.
The bliss of such a wonderful ecstasy cannot be described.
ਇਸ ਅਦਭੁੱਤਤਾ ਅਤੇ ਅਸਚਰਜਤਾ ਦਾ ਬਿਆਨ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦਾ 
کہنُ ن جائی اچرج بِسماد
۔ اچرج۔ حیران کرنے والی ۔ ( انوکھی ) ۔ بسماد۔ حیران کرنے والی ۔
۔ ایسا متواتر سنگیت حیران کرنے والی حیرانی جو بیان سے باہر ہے 

 ਤਿਨਿ ਦੇਖਿਆ ਜਿਸੁ ਆਪਿ ਦਿਖਾਏ ॥
tin daykhi-aa jis aap dikhaa-ay.
The one whom God Himself shows, experiences this bliss.
ਇਹ ਆਨੰਦ ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਵੇਖਿਆ ਹੈ ਜਿਸ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਵਿਖਾਉਂਦਾ ਹੈ,
تِنِ دیکھِیا جِسُ آپِ دِکھاۓ
۔ دیدار انہیں ہی ہوتا ہے ۔ جنہیں خود دیدار کراتا ہے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਤਿਸੁ ਜਨ ਸੋਝੀ ਪਾਏ ॥੧॥
naanak tis jan sojhee paa-ay. ||1||
O’ Nanak, God grants this understanding to such a devotee only. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਉਸ ਆਨੰਦ ਦੀ ਸਮਝ ਪ੍ਰਭੂ ਬਖ਼ਸ਼ਦਾ ਹੈ l
نانک تِسُ جن سۄجھی پاۓ
اے نانک۔ اس خادم کو سمجھ آجاتی ۔

 ਸੋ ਅੰਤਰਿ ਸੋ ਬਾਹਰਿ ਅਨੰਤ ॥
so antar so baahar anant.
The Infinite God is both within and same God is outside also.
ਉਹ ਬੇਅੰਤ ਭਗਵਾਨ ਅੰਦਰ ਬਾਹਰ (ਸਭ ਥਾਈਂ) ਮੌਜੂਦ ਹੈ
سۄ انّترِ سۄ باہرِ اننّتُ
سو۔ وہ ۔ انتر۔ دل میں۔ باہر۔ عالم میں۔ انت۔ بیشمار۔
جو انسانی دل میں ہے باہر بھی وہی ہے ۔ 

 ਘਟਿ ਘਟਿ ਬਿਆਪਿ ਰਹਿਆ ਭਗਵੰਤ ॥
ghat ghat bi-aap rahi-aa bhagvant.
 God is pervading in each and every heart.
ਪ੍ਰਭੂ ਹਰੇਕ ਸਰੀਰ ਵਿਚ ਰਮਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ 
گھٹِ گھٹِ بِیاپِ رہِیا بھگونّت
گھٹ گھٹ ۔ ہر دل میں۔ ۔ دیاپ ۔ بستا ہے ۔ بھگونت ۔ خدا۔ تقدیر ساز ۔
بیشمار خدا ہر دل میں بستا ہے ۔ 

 ਧਰਨਿ ਮਾਹਿ ਆਕਾਸ ਪਇਆਲ ॥
Dharan maahi aakaas pa-i-aal.
He is pervading in earth, in the sky and in the nether regions.
ਉਹ ਧਰਤੀਅਸਮਾਨ ਅਤੇ ਪਾਤਾਲ ਵਿੱਚ ਹੈ 
دھرنِ ماہِ آکاس پئِیال
دھرن۔ زمین۔ آکاس۔ آسان۔ پیال۔ پاتال۔
تقدیروں کا مالک خدا۔ زمین آسمان اور پاتال میں ہے 

 ਸਰਬ ਲੋਕ ਪੂਰਨ ਪ੍ਰਤਿਪਾਲ ॥
sarab lok pooran partipaal.
He is the perfect sustainer of all worlds.
ਸਾਰਿਆਂ ਜਹਾਨਾਂ ਦਾ ਉਹ ਮੁਕੰਮਲ ਪਾਲਣਹਾਰ ਹੈ
سرب لۄک پۄُرن پ٘رتِپال
سرب لوک ۔ سارے لوگوں میں ۔ پورن ۔ پرتپال۔ مکمل ۔ پرودگار۔ پرورش کرنے والا
۔ سارے لوگوں کا مکمل پرورش کرنے والا ہے ۔