Urdu-Page-292

ਕੋਊ ਨਰਕ ਕੋਊ ਸੁਰਗ ਬੰਛਾਵਤ ॥
ko-oo narak ko-oo surag banchhaavat.
as a result, some went to hell and some yearned for heaven.
ਤਦੋਂ ਕੋਈ ਜੀਵ ਨਰਕਾਂ ਦਾ ਭਾਗੀ ਤੇ ਕੋਈ ਸੁਰਗਾਂ ਦਾ ਚਾਹਵਾਨ ਬਣਿਆ
کۄئۄُ نرک کۄئۄُ سُرگ بنّچھاوت
۔ نرنک۔ دوزخ۔ تھر گ۔ جنت۔ بہشت ۔ سبھا وت چاہاتا ہے
۔ اس کے ملے میں کوئی جنت چاہتا ہے اور کسی کو دوزخ نصیب ہوا

 ਆਲ ਜਾਲ ਮਾਇਆ ਜੰਜਾਲ ॥ 
aal jaal maa-i-aa janjaal.
Domestic traps and entanglements of Maya,
ਘਰਾਂ ਦੇ ਧੰਧੇਮਾਇਆ ਦੇ ਬੰਧਨ,
آل جال مائِیا زنّجال
۔ آل جال۔ اولاد کا پھندہ ۔ سائیا جنجال۔ دنیاوی دولت کے پھندے
۔ اولاد۔ اور دولت کے پھندے پیدا ہوئے ۔ 

 ਹਉਮੈ ਮੋਹ ਭਰਮ ਭੈ ਭਾਰ ॥
 ha-umai moh bharam bhai bhaar.
loads of egotism, attachment, doubt and fear,

ਅਹੰਕਾਰਮੋਹਭੁਲੇਖੇਡਰ,
ہئُمےَ مۄہ بھرم بھےَ بھار
۔ ہونمے ۔ خودی ۔ موہ۔ محبت۔ بھرم۔ شک و شبہات ۔ بھے ۔ خوف
خودی ۔ محبت ۔ شک و شبہات و خوف نے زور کیا۔ 

 ਦੂਖ ਸੂਖ ਮਾਨ ਅਪਮਾਨ ॥
 dookh sookh maan apmaan.
sorrows and pleasure, honor and dishonor,
ਦੁੱਖਸੁਖਆਦਰ ਨਿਰਾਦਰੀ ,
دۄُکھ سۄُکھ مان اپمان
۔ دوکھ ۔ سوکھ ۔ عذاب و آسائب ۔
عذاب و آسائش ۔ شان و شوکت ۔ اور ذلت نمودار ہوئی ۔ 

 ਅਨਿਕ ਪ੍ਰਕਾਰ ਕੀਓ ਬਖ੍ਯ੍ਯਾਨ ॥
anik parkaar kee-o bakh-yaan.
all these came to be described in various ways.
ਇਹੋ ਜਿਹੀਆਂ ਕਈ ਕਿਸਮ ਦੀਆਂ ਗੱਲਾਂ ਚੱਲ ਪਈਆਂ
انِک پ٘رکار کیِئۄ بکھ٘ېان
انک پرکار۔ بیشمار قسم کے وکھان۔ تزکرے ۔
بیشمار قسم کے تذکرے ہونے لگے ۔ 

 ਆਪਨ ਖੇਲੁ ਆਪਿ ਕਰਿ ਦੇਖੈ ॥
aapan khayl aap kar daykhai.
He beholds His play that He created Himself.
ਪ੍ਰਭੂ ਆਪਣਾ ਤਮਾਸ਼ਾ ਕਰ ਕੇ ਆਪ ਵੇਖ ਰਿਹਾ ਹੈ 
آپن کھیلُ آپِ کرِ دیکھےَ
خدا۔ اپنا کھیل آپ کرکے ہی دیکھ رہا ہے 

 ਖੇਲੁ ਸੰਕੋਚੈ ਤਉ ਨਾਨਕ ਏਕੈ ॥੭॥
khayl sankochai ta-o naanak aikai. ||7||
O’ Nanak, when He winds up His play, then He is left alone by Himself. ||7||
ਹੇ ਨਾਨਕਜਦੋਂ ਇਸ ਖੇਡ ਨੂੰ ਸਮੇਟਦਾ ਹੈ ਤਾਂ ਇਕ ਆਪ ਹੀ ਆਪ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ l
کھیلُ سنّکۄچےَ تءُ نانک ایکے
سنکو چے ۔ قیامت برپا کرتا ہے ۔ یا کھیل ختم کرتا ہے َ
اور جب کھیل ختم کر دیتا یعنی جب قیامت برپا ہوجاتی ہے تو اے نانک پھر وا حد خدا ہی رہ جاتا ہے

 ਜਹ ਅਬਿਗਤੁ ਭਗਤੁ ਤਹ ਆਪਿ ॥
jah abigat bhagat tah aap.
Wherever the invisible God’s devotee is, He Himself is there.
ਜਿਥੇ ਅਦ੍ਰਿਸ਼ਟ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸੰਤ ਹੈਓਥੇ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੈ 
جہ ابِگتُ بھگتُ تہ آپِ
ابگت۔ لافناہ۔ بھگت۔ الہٰی عاشق۔ الہٰی پریمی
جہاں خدا ہے وہاں اسکا عاشق اور اسکاپریمی ہے اور جہاں اسکا پریمی ہے وہاں خدا ہے 

 ਜਹ ਪਸਰੈ ਪਾਸਾਰੁ ਸੰਤ ਪਰਤਾਪਿ ॥
jah pasrai paasaar sant partaap.
He unfolds the expanse of His creation for the glory of His Saints.
ਹਰ ਥਾਂ ਸੰਤਾਂ ਦੀ ਮਹਿਮਾ ਵਾਸਤੇ ਪ੍ਰਭੂ ਜਗਤ ਦਾ ਖਿਲਾਰਾ ਖਿਲਾਰ ਰਿਹਾ ਹੈ
جہ پسرےَ پاسارُ سنّت پرتاپِ
۔ پاسار۔ پھیلاؤ۔ سنت پرتاپ۔ خدا رسیدوں عارفوں کے وقار اور عزت کے لئے ۔
۔ ہر جا الہٰی عاشقوں پریمیوں اور پا کدامن عارفوں کی عظمت و عزت و حشمت کے لئے اس عالم کو پیدا کیا ہے ۔ اور یہ پسارا ہے

 ਦੁਹੂ ਪਾਖ ਕਾ ਆਪਹਿ ਧਨੀ ॥
duhoo paakh kaa aapeh Dhanee.
He is the master of both sides (of His manifest and unmanifest forms).
 ਦੋਹਾਂ ਪਾਸਿਆਂ ਦਾ ਮਾਲਕ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੈ (ਸੰਤਾਂ ਦਾ ਪ੍ਰਤਾਪ ਤੇ ਮਾਇਆ ਦਾ ਪ੍ਰਭਾਵ)
دُہۄُ پاکھ کا آپہِ دھنی
دوپاکھ ۔ دونوں طرفوں مراد سنت اور دنیاوی دولت ۔ دھنی ۔ مالک
۔ ہر دو خیا لون دنیاوی دولت کے خواہشمندوں اور پر ستاروں اور الہٰی پریمیوں کا ہے مالک خدا۔ 

 ਉਨ ਕੀ ਸੋਭਾ ਉਨਹੂ ਬਨੀ ॥
un kee sobhaa unhoo banee.
The glory of those saints behooves them alone.
ਪ੍ਰਭੂ ਜੀ ਆਪਣੀ ਸੋਭਾ ਆਪ ਹੀ ਜਾਣਦੇ ਹਨ 
اُن کی سۄبھا اُنہۄُ بنی
سوبھا۔ نیک شہرت۔ بنی ۔ جائز۔ ۔
الہٰی پریمیوں کی شہرت وعظمت و حشمت بھی الہٰی شان و شوکت ہی ہے ۔

 ਆਪਹਿ ਕਉਤਕ ਕਰੈ ਅਨਦ ਚੋਜ ॥
aapeh ka-utak karai anad choj.
He Himself performs His miracles and blissful frolics.
ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਖੇਡਾਂ ਖੇਡ ਰਿਹਾ ਹੈ ਆਪ ਹੀ ਆਨੰਦ ਤਮਾਸ਼ੇ ਕਰ ਰਿਹਾ ਹੈ,
آپہِ کئُتک کرےَ اند چۄج
کوتک ۔ کھیل۔ انند۔ خوشیان۔
خدا خود ہی دنیا مین کھیل تماشے کر رہا ہے او رخود ہی اس سے سکون اور خوشی حاصل کر رہا ہے ۔ خود ہی دنیاوی لذتیں اور لطف اُتھارہا ہے ۔ 

 ਆਪਹਿ ਰਸ ਭੋਗਨ ਨਿਰਜੋਗ ॥
aapeh ras bhogan nirjog.
He Himself enjoys pleasures, and yet He is not influenced by those pleasures.
ਆਪ ਹੀ ਰਸਾਂ ਨੂੰ ਭੋਗਣ ਵਾਲਾ ਹੈ ਤੇ ਆਪ ਹੀ ਨਿਰਲੇਪ ਹੈ
آپہِ رس بھۄگن نِرجۄگ
نرجوگ۔ بیلاگ۔
اور خود ہی اس سے بیلاگ اور بے واسطہ ہے ۔ 

 ਜਿਸੁ ਭਾਵੈ ਤਿਸੁ ਆਪਨ ਨਾਇ ਲਾਵੈ ॥
jis bhaavai tis aapan naa-ay laavai.
Whoever He pleases, He blesses with His Name,
ਜੋ ਉਸ ਨੂੰ ਭਾਉਂਦਾ ਹੈਉਸ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਨਾਮ ਵਿਚ ਜੋੜਦਾ ਹੈ,
جِسُ بھاوےَ تِسُ آپن ناءِ لاوےَ
بھاوے ۔ چاہتا ہے ۔ تس۔ اسے ۔ آپن ناے ۔ اپنے نام
جسے چاہتا ہے ۔ اپنے نام میں لگاتا ہے ۔ 

 ਜਿਸੁ ਭਾਵੈ ਤਿਸੁ ਖੇਲ ਖਿਲਾਵੈ ॥
jis bhaavai tis khayl khilaavai.
and whoever He wishes, He keeps them entangled in worldly pleasures.
ਤੇ ਜਿਸ ਨੂੰ ਚਾਹੁੰਦਾ ਹੈ ਮਾਇਆ ਦੀਆਂ ਖੇਡਾਂ ਖਿਡਾਉਂਦਾ ਹੈ
جِسُ بھاوےَ تِسُ کھیل کھِلاوےَ 
اور جسے چاہتا ہے دنیاوی دولت کے کھیل تماشوں میں لگادیتا ہے 

 ਬੇਸੁਮਾਰ ਅਥਾਹ ਅਗਨਤ ਅਤੋਲੈ ॥ 
baysumaar athaah agnat atolai.
O’ infinite, unfathomable and eternal God,
 ਹੇ ਬੇਅੰਤਹੇ ਅਥਾਹਹੇਹੇ ਅਡੋਲ ਪ੍ਰਭੂ!
بیشُمار اتھاہ اگنت اتۄلےَ
۔ بیشمار۔ حساب سے باہر۔ اتھاہ ۔ اندازے سے باہر ۔ انگت ۔ گینتی یا شمار سے باہر۔ انوے ۔ تول سے باہر
۔ اعداد و شمار سے بعید تول سے باہر ہے خدا 

 ਜਿਉ ਬੁਲਾਵਹੁ ਤਿਉ ਨਾਨਕ ਦਾਸ ਬੋਲੈ ॥੮॥੨੧॥
ji-o bulaavhu ti-o naanak daas bolai. ||8||21||
O’ Nanak, as You direct Your devotees, that is how they speak. ||8||21||
 
ਹੇ ਨਾਨਕ (ਅਰਦਾਸ ਕਰ ਤੇ ਆਖ), ਜਿਵੇਂ ਤੂੰ ਬੁਲਾਉਂਦਾ ਹੈਂ ਤਿਵੇਂ ਤੇਰੇ ਦਾਸ ਬੋਲਦੇ ਹਨ l
جِءُ بُلاوہُ تِءُ نانک داس بۄلےَ
۔ اے نانک۔ جیسے ہے فرمان الہٰی ویسے ہی خادم کہتا ہے ۔

 ਸਲੋਕੁ ॥
salok.
Shalok:
سلۄکُ
 ਜੀਅ ਜੰਤ ਕੇ ਠਾਕੁਰਾ ਆਪੇ ਵਰਤਣਹਾਰ ॥
jee-a jant kay thaakuraa aapay vartanhaar.
O’ Master of all beings and creatures, You Yourself are prevailing everywhere.
ਹੇ ਜੀਆਂ ਜੰਤਾਂ ਦੇ ਪਾਲਣ ਵਾਲੇ ਪ੍ਰਭੂਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਸਭ ਥਾਈਂ ਵਰਤ ਰਿਹਾ ਹੈਂ
جیء جنّت کے ٹھاکُرا آپے ورتݨہار
اے سب مخلوقات ک مالک سب میں تیرا نور ہے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਏਕੋ ਪਸਰਿਆ ਦੂਜਾ ਕਹ ਦ੍ਰਿਸਟਾਰ ॥੧॥
naanak ayko pasri-aa doojaa kah daristaar. ||1||
O’ Nanak, God is All-pervading; besides Him, where is any other to be seen?||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਸਭ ਥਾਈਂ ਮੌਜੂਦ ਹੈ, (ਉਸ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਕੋਈਦੂਜਾ ਕਿਥੇ ਵੇਖਣ ਵਿਚ ਆਇਆ ਹੈ?
نانک ایکۄ پسرِیا دۄُجا کہ د٘رِسٹار 
دوسرا کوئی نظر نہیں آتا نانک۔ پھیلا ہے واحد الہٰی نور 

 ਅਸਟਪਦੀ ॥
asatpadee.
Ashtapadee:
اسٹپدی
 ਆਪਿ ਕਥੈ ਆਪਿ ਸੁਨਨੈਹਾਰੁ ॥
aap kathai aap sunnaihaar.
God Himself is the speaker, and He Himself is the listener.
(ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਵਿਚਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਬੋਲ ਰਿਹਾ ਹੈ ਆਪ ਹੀ ਸੁਣਨ ਵਾਲਾ ਹੈ
آپِ کتھےَ آپِ سُننیَہارُ
گتھے ۔ کہتا ہے ۔ سنتہار۔ سننے والا۔
خود ہی خدا ہے کہنے والا خود ہی سننے والا ہے 

 ਆਪਹਿ ਏਕੁ ਆਪਿ ਬਿਸਥਾਰੁ ॥
aapeh ayk aap bisthaar.
He Himself is the One, and He Himself is the many. (prevailing in his creation)
ਉਹ ਆਪੇ ਹੀ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਆਪੇ ਹੀ ਅਨੇਕ
آپہِ ایکُ آپِ بِستھارُ
وستھار۔ پھیلاؤ۔
خود ہی واحد ہے اور اسی کا یہ پسارا ہے 

 ਜਾ ਤਿਸੁ ਭਾਵੈ ਤਾ ਸ੍ਰਿਸਟਿ ਉਪਾਏ ॥
jaa tis bhaavai taa sarisat upaa-ay.
When it so pleases Him, He creates the world,
ਜਦੋਂ ਉਸ ਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ ਤਾਂ ਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀ ਰਚ ਲੈਂਦਾ ਹੈ,
جا تِسُ بھاوےَ تا س٘رِسٹِ اُپاۓ
سر شٹ۔ عالم ۔ اپائے ۔ پیدا کرتا ہے ۔
۔ جب چاہتا ہے عالم پیدا کرتا ہے 

 ਆਪਨੈ ਭਾਣੈ ਲਏ ਸਮਾਏ ॥
aapnai bhaanai la-ay samaa-ay.
and when it so pleases, He absorbs it back into Himself.
ਤੇ ਜਦੋਂ ਉਸ ਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ (ਜਗਤ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਵਿਚਸਮੇਟ ਲੈਂਦਾ ਹੈ
آپنےَ بھاݨےَ لۓ سماۓ
بھانے ۔ ر ضاسے ۔ سمائے ۔ اپنے اندر جذب کر لیتا ہے ۔
جب چاہتا ہے قیامت سے اپنے میں ہی مجذوب کر لیتا ہے 
 

 ਤੁਮ ਤੇ ਭਿੰਨ ਨਹੀ ਕਿਛੁ ਹੋਇ ॥
tum tay bhinn nahee kichh ho-ay.
O’ God, there is nothing outside of You.
(ਹੇ ਪ੍ਰਭੂ!) ਤੈਥੋਂ ਵੱਖਰਾ ਕੁਝ ਨਹੀਂ ਹੈ,
تُم تے بھِنّن نہی کِچھُ ہۄءِ
مجذوب۔ بھن۔ علیحدہ ۔
۔ فرامن الہٰی کے بغیر کچھ ہونے والا ۔ 

 ਆਪਨ ਸੂਤਿ ਸਭੁ ਜਗਤੁ ਪਰੋਇ ॥
aapan soot sabh jagat paro-ay.
You have kept the entire world subject to Your command.
ਤੂੰ (ਆਪਣੇ ਹੁਕਮਰੂਪਧਾਗੇ ਵਿਚ ਸਾਰੇ ਜਗਤ ਨੂੰ ਪ੍ਰੋ ਰੱਖਿਆ ਹੈ 
آپن سۄُتِ سبھ جگتُ پرۄءِ
سوت۔ نظام۔
سارے عالم میں نظام اسی کا قائم ہے اور چلتا ہے 

 ਜਾ ਕਉ ਪ੍ਰਭ ਜੀਉ ਆਪਿ ਬੁਝਾਏ ॥
 jaa ka-o parabh jee-o aap bujhaa-ay.
Whom God Himself enables someone to understand this concept,
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਜੀ ਆਪ ਸੂਝ ਬਖ਼ਸ਼ਦੇ ਹਨ
جا کءُ پ٘ربھ جیءُ آپِ بُجھاۓ
بجھائے ۔ سمجھائے ۔
۔ جسے خود سمجھاتا ہے ۔ 

 ਸਚੁ ਨਾਮੁ ਸੋਈ ਜਨੁ ਪਾਏ ॥
 sach naam so-ee jan paa-ay.
that person alone realizes the eternal Naam
ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਦਾਥਿਰ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਨਾਮ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲੈਂਦਾ ਹੈ
سچُ نامُ سۄئی جنُ پاۓ
سچ نام ۔ سچ اور خدا کا سچا نام۔
سچا نام الہٰی وہی پاتا ہے ۔ 

 ਸੋ ਸਮਦਰਸੀ ਤਤ ਕਾ ਬੇਤਾ ॥
so samadrasee tat kaa baytaa.
Such a person looks impartially upon all, and is the knower of reality.
ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਸਭ ਵਲ ਇਕ ਨਜ਼ਰ ਨਾਲ ਵੇਖਣ ਵਾਲਾ ਤੇ ਅਸਲੀਅਤ (ਅਕਾਲ ਪੁਰਖਦੇ ਜਾਨਣ ਵਾਲਾ ਹੈ 
سۄ سمدرسی تت کا بیتا
سمدرسی ۔ سب کو ایک نظر سے دیکھنے والا۔ تت۔ حقیقت ۔ بیتا۔ جاننے والا۔
جو سب کو دیکھے ایک نظر سے حقیقت کی پہچان اسے 

 ਨਾਨਕ ਸਗਲ ਸ੍ਰਿਸਟਿ ਕਾ ਜੇਤਾ ॥੧॥
naanak sagal sarisat kaa jaytaa. ||1||
O’ Nanak, he is the conqueror of the entire world. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਉਹ ਸਾਰੇ ਜਗਤ ਦਾ ਜਿੱਤਣ ਵਾਲਾ ਹੈ
نانک سگل س٘رِسٹِ کا جیتا
سگل ۔ ساری۔ جیتا۔ فاتح ۔
اے نانک وہ فاتح ہے سارے عالم کا

 ਜੀਅ ਜੰਤ੍ਰ ਸਭ ਤਾ ਕੈ ਹਾਥ ॥
jee-a jantar sabh taa kai haath.
All beings and creatures are under His command.
ਸਾਰੇ ਜੀਵ ਜੰਤ ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਵੱਸ ਵਿਚ ਹਨ,
جیء جنّت٘ر سبھ تا کےَ ہاتھ
ہاتھ۔ زیر فرمان۔
ساری مخلوقات زیر فرمان خدا ہے

 ਦੀਨ ਦਇਆਲ ਅਨਾਥ ਕੋ ਨਾਥੁ ॥
deen da-i-aal anaath ko naath.
He is Merciful to the meek, and the support of the helpless.
ਉਹ ਦੀਨਾਂ ਤੇ ਦਇਆ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈਤੇਅਨਾਥਾਂ ਦਾ ਮਾਲਿਕ ਹੈ 
دیِن دئِیال اناتھ کۄ ناتھُ
ناتھ ۔ مالک۔
رحمت کرتا ہے مہربان ہے ۔ ناتوانوں بے مالکوں کا مالک ہے 

 ਜਿਸੁ ਰਾਖੈ ਤਿਸੁ ਕੋਇ ਨ ਮਾਰੈ ॥
jis raakhai tis ko-ay na maarai.
No one can destroy the one who is protected by God.
ਜਿਸ ਜੀਵ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਰੱਖਦਾ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ ਕੋਈ ਮਾਰ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ
جِسُ راکھےَ تِسُ کۄءِ ن مارےَ
جسکا محافظ آپ خدا ہے اسکو مار یگا کون ۔ 

 ਸੋ ਮੂਆ ਜਿਸੁ ਮਨਹੁ ਬਿਸਾਰੈ ॥
so moo-aa jis manhu bisaarai.
However, consider one spiritually dead whom God forsakes.
ਮੋਇਆ ਹੋਇਆ (ਤਾਂਉਹ ਜੀਵ ਹੈ ਜਿਸ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਭੁਲਾ ਦੇਂਦਾ ਹੈ 
سۄ مۄُیا جِسُ منہُ بِسارےَ
منہو۔ دل سے ۔ وسارے ۔ بھلائے ۔
مرتا ہے جس نے اپنے دل سے بھلائیا ہے ۔

 ਤਿਸੁ ਤਜਿ ਅਵਰ ਕਹਾ ਕੋ ਜਾਇ ॥
tis taj avar kahaa ko jaa-ay.
Forsaking Him, where else could anyone go?
ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਛੱਡ ਕੇ ਹੋਰ ਕਿਥੇ ਕੋਈ ਜਾਏ?
ٹسُ تجِ اور کہا کۄ جاءِ
تج ۔ چھوڑ ۔ اور ۔ اور۔
دامن خدا کا چھوڑ کر کہاں کوئی جائیگا۔ 

 ਸਭ ਸਿਰਿ ਏਕੁ ਨਿਰੰਜਨ ਰਾਇ ॥
sabh sir ayk niranjan raa-ay.
The immaculate supreme God is the protector of all.
ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਦੇ ਸਿਰ ਤੇ ਇਕ ਆਪ ਹੀ ਪ੍ਰਭੂ ਹੈ ਜੋ ਮਾਇਆ ਦੇ ਪ੍ਰਭਾਵ ਤੋਂ ਪਰੇ ਹੈ
سبھ سِرِ ایکُ نِرنّجن راءِ
سب سیر ۔ سب کے اوپر ۔ رائے ۔ راجہ ۔ حکمران ۔ 
سب کے سر پر پاک خدا ہے ۔ سایہ اسکا رحمت ہے

 ਜੀਅ ਕੀ ਜੁਗਤਿ ਜਾ ਕੈ ਸਭ ਹਾਥਿ ॥
jee-a kee jugat jaa kai sabh haath.
He controls all the the secrets of all creatures.
ਜਿਸ ਦੇ ਵੱਸ ਵਿਚ ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਦੀ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦਾ ਭੇਤ ਹੈ, 
جیء کی جُگتِ جا کےَ سبھ ہاتھِ
۔ سب جانداروں کی زندگی کا راز خدا کے ہاتھ میں ہے 

 ਅੰਤਰਿ ਬਾਹਰਿ ਜਾਨਹੁ ਸਾਥਿ ॥
antar baahar jaanhu saath.
Know that God is always with you within and without.
ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਅੰਦਰ ਬਾਹਰ ਸਭ ਥਾਈਂ ਅੰਗਸੰਗ ਜਾਣਹੁ 
انّترِ باہرِ جانہُ ساتھِ
۔ ہر جا وہ سب کا ساتھی ہے ۔ 
who is the treasure of virtues, Infinite and Endless,
ਜੋ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਖ਼ਜ਼ਾਨਾ ਹੈਬੇਅੰਤ ਹੈ ਤੇ ਅਪਾਰ ਹੈ,
گُن نِدھان بیئنّت اپار
سب اوصافوں کا خزانہ ہے ۔ وہ بیشمار لا محدود ہے 

 ਨਾਨਕ ਦਾਸ ਸਦਾ ਬਲਿਹਾਰ ॥੨॥
nanak daas sadaa balihaar.||2||
O’ Nanak, God’s devotees are forever dedicated to Him. ||2||
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਸੇਵਕ ਉਸ ਤੋਂ ਹਮੇਸ਼ਾਂ ਸਦਕੇ ਹਨ l
نانک داس سدا بلِہار
وہ خادم نانک ہمیشہ قربان ہے اس پر ۔ 

 ਪੂਰਨ ਪੂਰਿ ਰਹੇ ਦਇਆਲ ॥
pooran poor rahay da-i-aal.
The Perfect, Merciful God is pervading everywhere,
ਦਇਆ ਦੇ ਘਰ ਪ੍ਰਭੂ ਜੀ ਸਭ ਥਾਈਂ ਭਰਪੂਰ ਹਨ,
پۄُرن پۄُرِ رہے دئِیال
پورن۔ مکمل۔ پور رہے ۔ ہر جائی ہے ۔ دیال۔ مہربان۔
سب پر مہربان خدا ہرجائی ہے ۔ 

 ਸਭ ਊਪਰਿ ਹੋਵਤ ਕਿਰਪਾਲ ॥
sabh oopar hovat kirpaal.
and His kindness extends to all.
ਤੇ ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਤੇ ਮੇਹਰ ਕਰਦੇ ਹਨ
سبھ اۄُپرِ ہۄوت کِرپال
سب پر رحمت کی بارش کرتا ہے 

 ਅਪਨੇ ਕਰਤਬ ਜਾਨੈ ਆਪਿ ॥
apnay kartab jaanai aap.
He Himself knows His own ways.
ਪ੍ਰਭੂ ਆਪਣੇ ਖੇਲ ਆਪ ਜਾਣਦਾ ਹੈ,
اپنے کرتب جانےَ آپِ
کرتب۔ کام۔
۔ اپنے کاموں سے خود ہی واقف 

 ਅੰਤਰਜਾਮੀ ਰਹਿਓ ਬਿਆਪਿ ॥
antarjaamee rahi-o bi-aap.
The knower of our thinking, is pervading everywhere.
ਸਭ ਦੇ ਦਿਲਾਂ ਦੀਆਂ ਜਾਣਨ ਵਾਲਾ ਪ੍ਰਭੂ ਸਭ ਥਾਈਂ ਮੌਜੂਦ ਹੈ
انّترجامی رہِئۄ بِیاپِ
انتر جامی ۔ راز دلی جاننے والا۔ ویاپ ۔ بستا ہے ۔
راز دلی جانتا ہے اور سب میں نور اسی کا ہے 

 ਪ੍ਰਤਿਪਾਲੈ ਜੀਅਨ ਬਹੁ ਭਾਤਿ ॥
paratipaalai jee-an baho bhaat.
He cherishes His living beings in so many ways.
ਪ੍ਰਭੂ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਕਈ ਤਰੀਕੀਆਂ ਨਾਲ ਪਾਲਦਾ ਹੈ,
پرتِپالےَ جیِئن بہُ بھاتِ
پر تپالے ۔ پرورش کرتا ہے ۔
بہت سے طریقوں سے جانداروں کی پرورش کرتا ہے 

 ਜੋ ਜੋ ਰਚਿਓ ਸੁ ਤਿਸਹਿ ਧਿਆਤਿ ॥
jo jo rachi-o so tiseh Dhi-aat.
Whosoever He has created, meditates on Him.
ਜੋ ਜੋ ਜੀਵ ਉਸ ਨੇ ਪੈਦਾ ਕੀਤਾ ਹੈਉਹ ਉਸੇ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਿਮਰਦਾ ਹੈ
جۄ جۄ رچِئۄ سُ تِسہِ دھِیاتِ
دھیات ۔ یاد رکھتا ہے ۔
۔ جو اس نے کئے ہیں پیدا کرتے ہیں حمد خدا کی 

 ਜਿਸੁ ਭਾਵੈ ਤਿਸੁ ਲਏ ਮਿਲਾਇ ॥
jis bhaavai tis la-ay milaa-ay.
Whoever pleases Him, He unites that person with Him,
ਜਿਹੜਾ ਕੋਈ ਉਸ ਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ ਉਹ ਆਪਣੇ ਨਾਲ ਜੋੜ ਲੈਂਦਾ ਹੈ,
جِسُ بھاوےَ تِسُ لۓ مِلاءِ
اور الہٰی عاشق ہین۔ ان پر اپنی خوشنودی سے اپنے ساتھ ملاتا ہے ۔ 

 ਭਗਤਿ ਕਰਹਿ ਹਰਿ ਕੇ ਗੁਣ ਗਾਇ ॥
bhagat karahi har kay gun gaa-ay.
and such persons worship Him by singing His praises.
(ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਤੇ ਤ੍ਰੁੱਠਦਾ ਹੈਉਹ ਉਸ ਦੇ ਗੁਣ ਗਾ ਕੇ ਉਸ ਦੀ ਭਗਤੀ ਕਰਦੇ ਹਨ
بھگتِ کرہِ ہرِ کے گُݨ گاءِ
ہر کے گن گائے ۔ الہٰی حمدوچناہ
اور ایسے لوگ اس کی حمد گاتے ہوئے اس کی عبادت کرتے ہیں 

 ਮਨ ਅੰਤਰਿ ਬਿਸ੍ਵਾਸੁ ਕਰਿ ਮਾਨਿਆ ॥ 
man antar biswas kar maani-aa. 
The one who with heartfelt faith has believed in Him,
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਮਨ ਵਿਚ ਸ਼ਰਧਾ ਧਾਰ ਕੇ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ (ਸੱਚਮੁਚ ਹੋਂਦ ਵਾਲਾਮੰਨ ਲਿਆ ਹੈ
من انّترِ بِس٘واسُ کرِ مانِیا
۔ بسواس۔ یقین ۔
جس نے عقیدت مندی سے خدا کو دل میں بسائیا ہے

 ਕਰਨਹਾਰੁ ਨਾਨਕ ਇਕੁ ਜਾਨਿਆ ॥੩॥
 karanhaar nanak ik jaani-aa. ||3||
O’ Nanak, he has realized the one Creator ||3||
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਨੇ ਉਸ ਇੱਕ ਕਰਤਾਰ ਨੂੰ ਹੀ ਪਛਾਣਿਆ ਹੈ l 
کرنہارُ نانک اِکُ جانِیا
کرنہار۔ کار ساز ۔ کرتار ۔ کرنے والا۔
اے نانک۔ ۔ اس نے کار ساز کرتار خدا پہچانا ہے

 ਜਨੁ ਲਾਗਾ ਹਰਿ ਏਕੈ ਨਾਇ ॥
jan laagaa har aikai naa-ay.
A devotee who is attuned only to God’s Name,
(ਜੋਸੇਵਕ ਕੇਵਲ ਇਕ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਵਿਚ ਟਿਕਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ,
جنُ لاگا ہرِ ایکےَ ناءِ
ہر ۔ خدا۔ ایکے نائے ۔ واحد نام میں
جس کی واحد خدا کے نام سے ہے محبت 

 ਤਿਸ ਕੀ ਆਸ ਨ ਬਿਰਥੀ ਜਾਇ ॥
tis kee aas na birthee jaa-ay.
his desires do not go in vain.
ਉਸ ਦੀ ਆਸ ਕਦੇ ਖ਼ਾਲੀ ਨਹੀਂ ਜਾਂਦੀ
تِس کی آس ن بِرتھی جاءِ
۔ آس۔ اُمید ۔ برتھی ۔بیکار۔ بیفائدہ
اُمید اس کی بےفائدہ جاتی نہیں۔ 

 ਸੇਵਕ ਕਉ ਸੇਵਾ ਬਨਿ ਆਈ ॥
sayvak ka-o sayvaa ban aa-ee.
It behoves a devotee to meditate on God and serve His creation.
ਸੇਵਕ ਨੂੰ ਇਹ ਫੱਬਦਾ ਹੈ ਕਿ ਸਭ ਦੀ ਸੇਵਾ ਕਰੇ
سیوک کءُ سیوا بنِ آئی
خادم خدا کے لئے لازم ہے 

 ਹੁਕਮੁ ਬੂਝਿ ਪਰਮ ਪਦੁ ਪਾਈ ॥
hukam boojh param pad paa-ee.
By understanding God’s will he obtains the supreme spiritual state.
ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਸਮਝ ਕੇ ਉਸ ਨੂੰ ਉੱਚਾ ਦਰਜਾ ਮਿਲ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
حُکمُ بۄُجھِ پرم پدُ پائی
۔ پرم پد۔ اونچا رتبہ ۔
خدمت فرمان الہٰی سمجھنے سے بلند رتبے ملتے ہیں۔ 

 ਇਸ ਤੇ ਊਪਰਿ ਨਹੀ ਬੀਚਾਰੁ ॥ 
is tay oopar nahee beechaar 
There is no better contemplation than meditating on God’s Name for those,
ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਇਸ (ਨਾਮ ਸਿਮਰਨਤੋਂ ਵੱਡਾ ਹੋਰ ਕੋਈ ਵਿਚਾਰ ਨਹੀਂ ਸੁੱਝਦਾ l
اِس تے اۄُپرِ نہی بیِچارُ
اس سے اوپر۔ اس سے نیک بلند۔
اس سے بلند نہیں خیال کوئی سمجھ کوئی 


ਜਾ ਕੈ ਮਨਿ ਬਸਿਆ ਨਿਰੰਕਾਰੁ ॥
 jaa kai man basi-aa nirankaar
in whose mind dwells the formless God.
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਵੱਸਦਾ ਹੈ l
جا کےَ منِ بسِیا نِرنّکارُ
جس کے دل میں بس گیا پاک خدا

 ਬੰਧਨ ਤੋਰਿ ਭਏ ਨਿਰਵੈਰ ॥
banDhan tor bha-ay nirvair.
Breaking the bonds of Maya, they become free from enmity,
ਮਾਇਆ ਦੇ ਬੰਧਨ ਤੋੜ ਕੇ ਉਹ ਨਿਰਵੈਰ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨ,
بنّدھن تۄرِ بھۓ نِرویَر
بندھن۔ غلامی ۔ نرویر ۔ بلا دشمنی
۔ ذہنی غلامی کی بندشیں توڑ کر کسی سے دشمنی نہ رہی 

 ਅਨਦਿਨੁ ਪੂਜਹਿ ਗੁਰ ਕੇ ਪੈਰ ॥
an-din poojeh gur kay pair.
and they always respectfully follow the Guru’s advice.
ਤੇ ਹਰ ਵੇਲੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੇ ਚਰਨ ਪੂਜਦੇ ਹਨ
اندِنُ پۄُجہِ گُر کے پیَر
۔ پوچو ۔ پرستش کرؤ۔
ایسے اعلے مرشد کے پاوں کی کرو پرستش 

 ਇਹ ਲੋਕ ਸੁਖੀਏ ਪਰਲੋਕ ਸੁਹੇਲੇ ॥
ih lok sukhee-ay parlok suhaylay.
They are at peace in this world, and in the next,
ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਇਸ ਜਨਮ ਵਿਚ ਸੁਖੀ ਹਨਤੇ ਪਰਲੋਕ ਵਿਚ ਭੀ ਸੌਖੇ ਹੁੰਦੇ ਹਨ
اِہ لوک سُکھیِۓ پرلوک سُہیلے 
۔ ہر دو عالم میں سکھ پاؤ گے,