Urdu-Page-291

 ਆਪਨ ਖੇਲੁ ਆਪਿ ਵਰਤੀਜਾ ॥
aapan khayl aap varteejaa.
He Himself has staged His own play,
(ਜਗਤ ਰੂਪਅਪਾਣੀ ਖੇਡ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪ ਬਣਾਈ ਹੈ,
آپن کھیلُ آپِ ورتیِجا
یہ عالم سب اسکا کھیل اسی کا ہے بنائیا ہوا۔ 

 ਨਾਨਕ ਕਰਨੈਹਾਰੁ ਨ ਦੂਜਾ ॥੧॥
naanak karnaihaar na doojaa. ||1||
O’ Nanak, there is no other Creator.
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਕੋਈ ਹੋਰ ਸਿਰਜਣਹਾਰ ਨਹੀਂ ਹੈ l 
نانک کرنیَہارُ ن دۄُجا
اے نانک اس کے علاوہ نہیں کوئی دوسرا۔

 ਜਬ ਹੋਵਤ ਪ੍ਰਭ ਕੇਵਲ ਧਨੀ ॥
jab hovat parabh kayval Dhanee.
When there was only God, the Master,
ਜਦੋਂ ਮਾਲਕ ਪ੍ਰਭੂ ਸਿਰਫ਼ (ਆਪ ਹੀਸੀ, 
جب ہۄوت پ٘ربھ کیول دھنی
ہووت۔ ہوتا ہے ۔ کیول۔ صرف۔ دھنی ۔مالک ۔
جب خدا ہی اکیال تھا۔ 

 ਤਬ ਬੰਧ ਮੁਕਤਿ ਕਹੁ ਕਿਸ ਕਉ ਗਨੀ ॥
tab banDh mukat kaho kis ka-o ganee.
then who was considered attached to Maya or liberated from Maya?
ਤਦੋਂ ਦੱਸੋਕਿਸ ਨੂੰ ਬੰਧਨਾਂ ਵਿਚ ਫਸਿਆ ਹੋਇਆਤੇ ਕਿਸ ਨੂੰ ਮੁਕਤਿ ਸਮਝੀਏ?
تب بنّدھ مُکتِ کہُ کِس کءُ گنی
بندھ ۔ غلامی ۔ مکت ۔ آزادی۔ گنی ۔ سمجھیں۔ شمار کریں۔
 تب کس کو غلام اور کسے آزاد خیال کریں۔

 ਜਬ ਏਕਹਿ ਹਰਿ ਅਗਮ ਅਪਾਰ ॥
jab aykeh har agam apaar.
When there was only God, Unfathomable and Infinite,
ਜਦੋਂ ਅਗਮ ਤੇ ਬੇਅੰਤ ਪ੍ਰਭੂ ਇਕ ਆਪ ਹੀ ਸੀ
جب ایکہِ ہرِ اگم اپار
ایکہہ۔ ایک ہی ۔ اگم۔ انسانی رسائی سے اوپر ۔ اپار۔ جس کا کوئی کنارہ نہ ہو ۔
جب خدا واحد انسانی رسائی سے بلند اعداد و شمار سے باہر اکیلا تھا 

 ਤਬ ਨਰਕ ਸੁਰਗ ਕਹੁ ਕਉਨ ਅਉਤਾਰ ॥
tab narak surag kaho ka-un a-utaar.
then who entered hell, and who entered heaven?
ਤਦੋਂ ਦੱਸੋਨਰਕਾਂ ਤੇ ਸੁਰਗਾਂ ਵਿਚ ਆਉਣ ਵਾਲੇ ਕੇਹੜੇ ਜੀਵ ਸਨ?
تب نرک سُرگ ک ائُتار ہُ کئُن
نرک ۔ دوزخ۔ سورگ۔ بہشت۔ جنت۔ اوتار۔ پیدا ہونے والے 
 تو اس وقت کسے بہشت حاصل تھی اور کسے دوزخ نصیب تھا۔,

 ਜਬ ਨਿਰਗੁਨ ਪ੍ਰਭ ਸਹਜ ਸੁਭਾਇ ॥
jab nirgun parabh sahj subhaa-ay.
When God was without attributes, in absolute poise,
ਜਦੋਂ ਸੁਤੇ ਹੀ ਪ੍ਰਭੂ ਤ੍ਰਿਗੁਣੀ ਮਾਇਆ ਤੋਂ ਪਰੇ ਸੀ, (ਭਾਵਜਦੋਂ ਉਸ ਨੇ ਮਾਇਆ ਰਚੀ ਹੀ ਨਹੀਂ ਸੀ),
جب نِرگُن پ٘ربھ سہج سُبھاءِ
۔ نرگن۔ بلا اوصاف۔
 جب دنیاوی دولت اور سرمایہ کا وجود ہی نہ تھا

 ਤਬ ਸਿਵ ਸਕਤਿ ਕਹਹੁ ਕਿਤੁ ਠਾਇ ॥
tab siv sakat kahhu kit thaa-ay.
then where was the (shiva) soul and where was the (shakti)
ਤਦ ਦੱਸੋ ਮਨ ਕਿਹੜੇ ਥਾਂ ਤੇ ਸੀ ਅਤੇ ਮਾਦਾ ਕਿੱਥੇ ਸੀ?
تب سِو سکتِ کہہُ کِتُ ٹھاءِ
سو۔ روح۔ سکت۔ دنیاوی کائنات قدرت۔ ٹھائے ۔ ٹھکانہ ۔
تب جاندار اور کائنات قدرت کہاں تھی ۔ 

 ਜਬ ਆਪਹਿ ਆਪਿ ਅਪਨੀ ਜੋਤਿ ਧਰੈ ॥
jab aapeh aap apnee jot Dharai.
When He held His Own Light unto Himself,
ਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਆਪਣੀ ਜੋਤਿ ਜਗਾਈ ਬੈਠਾ ਸੀ,
جب آپہِ آپِ اپنی جۄتِ دھرےَ
آپیہہ آپ ۔ خود بخود۔ جوت۔ نور۔
جب عالم میں نور الہٰی واحد تھا ۔ 

 ਤਬ ਕਵਨ ਨਿਡਰੁ ਕਵਨ ਕਤ ਡਰੈ ॥
tab kavan nidar kavan kat darai.
then who was fearless, and who was afraid of anyone?
ਤਦੋਂ ਕੌਣ ਨਿਡਰ ਸੀ ਤੇ ਕੌਣ ਕਿਸੇ ਤੋਂ ਡਰਦੇ ਸਨ
تب کون نِڈرُ کون کت ڈرےَ
نڈر۔ بیخوف۔ ڈرے ۔ خوف۔
 تو کسے خوف تھا اور کون بیخوف تھا 

 ਆਪਨ ਚਲਿਤ ਆਪਿ ਕਰਨੈਹਾਰ ॥
aapan chalit aap karnaihaar.
He Himself is the Performer of His own plays;
ਉਹ ਆਪਣੇ ਤਮਾਸ਼ੇ ਆਪ ਹੀ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈ
آپن چلِت آپِ کرنیَہار
چلت ۔ کھیل ۔بیوہار۔ کرنیہار۔ کرنے کے لائق۔
۔ ۔ خدا ہی اپنے کھیل اور کائنات قدرت کو بنانے والا ہے ۔,

 ਨਾਨਕ ਠਾਕੁਰ ਅਗਮ ਅਪਾਰ ॥੨॥
naanak thaakur agam apaar. ||2||
O’ Nanak, the Supreme Master is Unfathomable and Infinite. ||2||
ਹੇ ਨਾਨਕਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਅਗਮ ਤੇ ਬੇਅੰਤ ਹੈ 
نانک ٹھاکُر اگم اپار 
ٹھاکر۔ آقا۔
اے نانک وہ انسانی رسائی سے بعید و بلند و بالا ہے اور لا محدود آقاہے ۔

 ਅਬਿਨਾਸੀ ਸੁਖ ਆਪਨ ਆਸਨ ॥
abhinaasee sukh aapan aasan.
When the Immortal God was absorbed in His own state of peace and poise,
ਜਦੋਂ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਆਪਣੀ ਮੌਜ ਵਿਚ ਆਪਣੇ ਹੀ ਸਰੂਪ ਵਿਚ ਟਿਕਿਆ ਬੈਠਾ ਸੀ
ابِناسی سُکھ آپن آسن
ابناسی۔ لافانی ۔ آسن۔ ٹھکانہ ۔ تخت۔
جب خدا اپنے خوئش ٹھکانے پر بلا حرکت و کار و حدت میں تھا۔ 
,

 ਤਹ ਜਨਮ ਮਰਨ ਕਹੁ ਕਹਾ ਬਿਨਾਸਨ ॥
tah janam maran kaho kahaa binaasan.
then where was birth, death and destruction?
ਤਦੋਂ ਦੱਸੋਜੰਮਣਾ ਮਰਨਾ ਤੇ ਮੌਤ ਕਿਥੇ ਸਨ?
تہ جنم مرن کہُ کہا بِناسن 
تیہہ۔ تب ۔ جنم مرن۔ زندگی اور موت ۔ وناسن ۔ خاتمہ ۔
 تب موت و پیدائش کہان تھی ۔ 

 ਜਬ ਪੂਰਨ ਕਰਤਾ ਪ੍ਰਭੁ ਸੋਇ ॥
jab pooran kartaa parabh so-ay.
When there was only God, the Perfect Creator,
ਜਦੋਂ ਕਰਤਾਰ ਪੂਰਨ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਸੀ,
جب پۄُرن کرتا پ٘ربھُ سۄءِ
پورن۔ کامل۔ مکمل۔ کرتا۔ کرتار۔ کرنے والا۔ پربھ سوئے ۔ خدا وہی ہے ۔
جب کامل خدا کار ساز ۔ کرتار عالم میں واحد تھا 

 ਤਬ ਜਮ ਕੀ ਤ੍ਰਾਸ ਕਹਹੁ ਕਿਸੁ ਹੋਇ ॥
tab jam kee taraas kahhu kis ho-ay.
then who was afraid of death?
ਤਦੋਂ ਦੱਸੋਮੌਤ ਦਾ ਡਰ ਕਿਸ ਨੂੰ ਹੋ ਸਕਦਾ ਸੀ
تب جم کی ت٘راس کہہُ کِسُ ہۄءِ ۔
جم کی تراس۔ موت کا خوف۔ فرشتہ موت کا خوف۔
تو موت کے فرشتے کا خوف کسے ہوتا ہے ۔ 

 ਜਬ ਅਬਿਗਤ ਅਗੋਚਰ ਪ੍ਰਭ ਏਕਾ ॥
jab abigat agochar parabh aykaa.
When there was only the One God, unmanifest and incomprehensible,
ਜਦੋਂ ਅਦ੍ਰਿਸ਼ਟ ਤੇ ਅਗੋਚਰ ਪ੍ਰਭੂ ਇਕ ਆਪ ਹੀ ਸੀ
جب ابِگت اگۄچر پ٘ربھ ایکا
اوگت ۔ لافناہ ۔ دنیاوی حالت سے بیخر ۔ اگوچر ۔جس کے متعلق بیان نہ ہو سکے
جب آنکھون سے اوجھل ۔ فہم سے بعید نا قابل بیان خدا خود ہی تھا واحد 

 ਤਬ ਚਿਤ੍ਰ ਗੁਪਤ ਕਿਸੁ ਪੂਛਤ ਲੇਖਾ ॥
tab chitar gupat kis poochhat laykhaa.
then whom Chittar and Gupat (the recording angels) asked for the account of their deeds?
ਤਦੋਂ ਚਿਤ੍ਰ ਗੁਪਤ ਕਿਸ ਨੂੰ ਲੇਖਾ ਪੁੱਛ ਸਕਦੇ ਸਨ?
تب چِت٘ر گُپت کِسُ پۄُچھت لیکھا ۔
۔ چتر گپت ۔ انسانی اعمال کے راز۔ تحریر کرنےو الے 
۔ تب جاسو سان الہٰی لکھتے ہین۔ اعمال انسان سے حساب کون پوچھتا تھا 

 ਜਬ ਨਾਥ ਨਿਰੰਜਨ ਅਗੋਚਰ ਅਗਾਧੇ ॥
jab naath niranjan agochar agaaDhay.
When there was only the Immaculate, Incomprehensible, Unfathomable Master,
ਜਦੋਂ ਮਾਲਕ ਮਾਇਆਰਹਿਤ ਅਥਾਹ ਅਗੋਚਰ ਆਪ ਹੀ ਸੀ,
جب ناتھ نِرنّجن اگۄچر اگادھے
۔ ناتھ ۔ مالک۔ نرنجن۔ پاک۔ ییداغ۔ اگاوھ ۔ جسکا اندازہ نہ ہو سکے ۔
۔ جب مالک پاک خدا نا قابل بیان اور بعید از اندازہ واحد تھا

 ਤਬ ਕਉਨ ਛੁਟੇ ਕਉਨ ਬੰਧਨ ਬਾਧੇ ॥
tab ka-un chhutay ka-un banDhan baaDhay.
then who was emancipated, and who was held in the bonds of Maya?
ਤਦੋਂ ਕੌਣ ਮਾਇਆ ਦੇ ਬੰਧਨਾਂ ਤੋਂ ਮੁਕਤ ਸਨ ਤੇ ਕੌਣ ਬੰਧਨਾਂ ਵਿਚ ਬੱਝੇ ਹੋਏ ਹਨ?
تب کئُن چھُٹے کئُن بنّدھن بادھے ۔
بندھن۔ غلامی۔
۔ تب کون تھا ۔ غلام اور آزادی کسے تھی,

 ਆਪਨ ਆਪ ਆਪ ਹੀ ਅਚਰਜਾ ॥
aapan aap aap hee acharjaa.
That wonderful God alone is Himself like Him.
ਉਹ ਅਚਰਜਰੂਪ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪਣੇ ਵਰਗਾ ਆਪ ਹੀ ਹੈ
آپن آپ آپ ہی اچرجا
اچرجا۔ حیران کرنے والا۔
۔ تب حیران کرنے والا حیرانی بھر ا خدا واحد و لاثانی تھا 

 ਨਾਨਕ ਆਪਨ ਰੂਪ ਆਪ ਹੀ ਉਪਰਜਾ ॥੩॥
naanak aapan roop aap hee uparjaa. ||3||
O’ Nanak, He Himself has created His Own Form. ||3||
ਹੇ ਨਾਨਕਆਪਣਾ ਆਕਾਰ ਉਸ ਨੇ ਆਪ ਹੀ ਪੈਦਾ ਕੀਤਾ ਹੈ l
نانک آپن رۄُپ آپ ہی اُپرجا
اپرجا۔ پیدا کیا۔
۔ اے نانک اپنا پھیلاؤ اپنی شکل وصورت کائنات قدرت خود ہی پیدا کرنے والا ہے ۔

 ਜਹ ਨਿਰਮਲ ਪੁਰਖੁ ਪੁਰਖ ਪਤਿ ਹੋਤਾ ॥
jah nirmal purakh purakh pat hotaa.
When the immaculate Being, the Master of mankind was all by Himself,
ਜਿਸ ਅਵਸਥਾ ਵਿਚ ਜੀਵਾਂ ਦਾ ਮਾਲਕ ਨਿਰਮਲ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਸੀ,
جہ نِرمل پُرکھُ پُرکھ پتِ ہۄتا
نرمل۔ پاک ۔ پر کھ پت ۔ انسانوں کا ملاک۔
جب مالک انسانوں کا تھا واحد پاک خدا 

 ਤਹ ਬਿਨੁ ਮੈਲੁ ਕਹਹੁ ਕਿਆ ਧੋਤਾ ॥
tah bin mail kahhu ki-aa Dhotaa.
there was no filth of sins, so what was there to be washed clean?
ਓਥੇ ਉਹ ਮੈਲਰਹਿਤ ਸੀਤਾਂ ਦੱਸੋਉਸ ਨੇ ਕੇਹੜੀ ਮੈਲ ਧੋਣੀ ਸੀ
تہ بِنُ میَلُ کہہُ کِیا دھۄتا 
تو ناپاکیزگی دور کس کی کرنی تھی 

 ਜਹ ਨਿਰੰਜਨ ਨਿਰੰਕਾਰ ਨਿਰਬਾਨ ॥
jah niranjan nirankaar nirbaan.
When there was only the immaculate, formless, and desire-free God,
ਜਿਥੇ ਮਾਇਆਰਹਿਤਆਕਾਰਰਹਿਤ ਤੇ ਵਾਸ਼ਨਾਰਹਿਤ ਪ੍ਰਭੂ ਹੀ ਸੀ
جہ نِرنّجن نِرنّکار نِربان
نرنجن۔ بیداگ۔ پاک۔ نرنکار۔ بلا شکل و صورت ۔ بلاحسم۔ نربان۔ بلا خواہشات ۔
جب ہر طرف بلا شکل ،بلا جسم اور بلا خواہشات والا خدا ہی تھا 

 ਤਹ ਕਉਨ ਕਉ ਮਾਨ ਕਉਨ ਅਭਿਮਾਨ ॥
tah ka-un ka-o maan ka-un abhimaan.
then who had self esteem and who had ego?
ਉਥੇ ਮਾਣ ਅਹੰਕਾਰ ਕਿਸ ਨੂੰ ਹੋਣਾ ਸੀ?
تہ کئُن کءُ مان کئُن ابھِمان
تو نفسانی خواہشات اور انا کس کی تھی

 ਜਹ ਸਰੂਪ ਕੇਵਲ ਜਗਦੀਸ ॥
jah saroop kayval jagdees.
When there was only the Master of the Universe,
ਜਿਥੇ ਕੇਵਲ ਜਗਤ ਦੇ ਮਾਲਕ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਹੀ ਹਸਤੀ ਸੀ,
جہ سرۄُپ کیول جگدیِس
جگدیس ۔ مالک عالم۔
۔ جب عالم میں تھا واحد خدا

 ਤਹ ਛਲ ਛਿਦ੍ਰ ਲਗਤ ਕਹੁ ਕੀਸ ॥
tah chhal chhidar lagat kaho kees.
then who was tainted by fraud and sin?
ਓਥੇ ਦੱਸੋਛਲ ਤੇ ਐਬ ਕਿਸ ਨੂੰ ਲੱਗ ਸਕਦੇ ਸਨ?
تہ چھل چھِد٘ر لگت کہُ کیِس
چھل چھدر۔ بدکاریان۔ دہوکا بازی ۔ فریب کاری ۔
تو دھوکا فریب کس سے ہونا تھا

 ਜਹ ਜੋਤਿ ਸਰੂਪੀ ਜੋਤਿ ਸੰਗਿ ਸਮਾਵੈ ॥
jah jot saroopee jot sang samaavai.
When the embodiment of Light (God) was immersed in His Own Light,
ਜਦੋਂ ਜੋਤਿਰੂਪ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪਣੀ ਹੀ ਜੋਤਿ ਵਿਚ ਲੀਨ ਸੀ
جہ جۄتِ سرۄُپی جۄتِ سنّگِ سماوےَ
جوت سروپی ۔نورانی چہرہ ۔ صرف نور۔ نور میں مجذوب۔
۔ جب خدا اپنی ہی نورانی میں تھا مجذوب ۔ ,

 ਤਹ ਕਿਸਹਿ ਭੂਖ ਕਵਨੁ ਤ੍ਰਿਪਤਾਵੈ ॥
tah kiseh bhookh kavan tariptaavai.
then who was longing for Maya, and who was satisfied?
ਤਦੋਂ ਕਿਸ ਨੂੰ (ਮਾਇਆ ਦੀਭੁੱਖ ਹੋ ਸਕਦੀ ਸੀ ਤੇ ਕੌਣ ਰੱਜਿਆ ਹੋਇਆ ਸੀ?
تہ کِسہِ بھۄُکھ کونُ ت٘رِپتاوےَ ۔
ترپتاوے ۔ سیر ہوتا ہے ۔
تو بھوک کسے تھی ہونی اور سیر کون ہوناتھا ۔ 

 ਕਰਨ ਕਰਾਵਨ ਕਰਨੈਹਾਰੁ ॥
karan karaavan karnaihaar.
The Creator is the doer of everything and the Cause of all causes.
ਕਰਤਾਰ ਆਪ ਹੀ ਸਭ ਕੁਝ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਤੇ ਜੀਵਾਂ ਤੋਂ ਕਰਾਉਣ ਵਾਲਾ ਹੈ
کرن کراون کرنیَہارُ
کرن کراون ۔ کرنے اور کرانے والا۔ کرنیہار۔ کرنے کے لائق ۔
کرنے اور کرانے والا ہے خدا واحد 

 ਨਾਨਕ ਕਰਤੇ ਕਾ ਨਾਹਿ ਸੁਮਾਰੁ ॥੪॥
naanak kartay kaa naahi sumaar. ||4||
O Nanak, the Creator is beyond estimation ||4||
ਹੇ ਨਾਨਕਕਰਤਾਰ ਦਾ ਅੰਦਾਜ਼ਾ ਨਹੀਂ ਪਾਇਆ ਜਾ ਸਕਦਾ
نانک کرتے کا ناہِ شُمارُ
کرتے ۔ کرتار ۔ خدا۔ سمار۔ اندازہ ۔
اے نانک کار ساز کرتا ر اندازوں سے باہر ہے 

 ਜਬ ਅਪਨੀ ਸੋਭਾ ਆਪਨ ਸੰਗਿ ਬਨਾਈ ॥
jab apnee sobhaa aapan sang banaa-ee.
When He contained His Glory within Himself,
ਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪਣੀ ਸੋਭਾ ਆਪਣੇ ਹੀ ਨਾਲ ਬਣਾਈ ਸੀ, (ਭਾਵਜਦੋਂ ਕੋਈ ਹੋਰ ਉਸ ਦੀ ਸੋਭਾ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਨਹੀਂ ਸੀ)
جب اپنی سۄبھا آپن سنّگِ بنائی
سوبھا۔ شہرت۔ مشہوری ۔ آپن سنگ۔ اپنے ہی ساتھ
جب خدا اپنی نیکی اور شہرت از خود کرنے والا تھا ۔ 

 ਤਬ ਕਵਨ ਮਾਇ ਬਾਪ ਮਿਤ੍ਰ ਸੁਤ ਭਾਈ ॥
tab kavan maa-ay baap mitar sut bhaa-ee.
then who was mother, father, friend, child or sibling?
ਤਦੋਂ ਕੌਣ ਮਾਂਪਿਉਮਿਤ੍ਰਪੁਤ੍ਰ ਜਾਂ ਭਰਾ ਸੀ?
تب کون ماءِ باپ مِت٘ر سُت بھائی
تو وہاں ماں باپ دوست بیٹے بھائی کہاں تھے 

 ਜਹ ਸਰਬ ਕਲਾ ਆਪਹਿ ਪਰਬੀਨ ॥
jah sarab kalaa aapeh parbeen.
When God Himself was ultimate in all the powers,
ਜਦੋਂ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਆਪ ਹੀ ਸਾਰੀਆਂ ਤਾਕਤਾਂ ਵਿਚ ਸਿਆਣਾ ਸੀ,
جہ سرب کلا آپہِ پربیِن
۔ سرب ۔ کلا۔ تمام قوتوں سے آراستہ ۔ پربیسن۔ دور اندیش ماہر ۔
۔ جب خدا خود ہی ہر فن مولا تھا سب طاقتوں سے مرقع تھا

 ਤਹ ਬੇਦ ਕਤੇਬ ਕਹਾ ਕੋਊ ਚੀਨ ॥
tah bayd katayb kahaa ko-oo cheen.
then where was anybody reading the Vedas and katebas (the religious books)?
ਤਦੋਂ ਕਿਥੇ ਕੋਈ ਵੇਦ (ਹਿੰਦੂ ਧਰਮ ਪੁਸਤਕਤੇ ਕਤੇਬਾਂ (ਮੁਸਲਮਾਨਾਂ ਦੇ ਧਰਮ ਪੁਸਤਕਵਿਚਾਰਦਾ ਸੀ?
تہ بید کتیب کہا کۄئۄُ چیِن 
 چین ۔ سمجھنا۔
تب وید اور فرانوں کو مطالعہ کرنے والاکون تھا 

 ਜਬ ਆਪਨ ਆਪੁ ਆਪਿ ਉਰਿ ਧਾਰੈ ॥
jab aapan aap aap ur Dhaarai.
When He kept Himself, to His own self,
ਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਆਪ ਹੀ ਆਪਣੇ ਆਪ ਵਿਚ ਟਿਕਾਈ ਬੈਠਾ ਸੀ,
جب آپن آپُ آپِ اُرِ دھارےَ
آپن آپ۔ خود بخود ۔ اردھارے ۔ دل میں بسائے ۔
۔ جب خدا خود ہی اپنے آپ میں مصروف تھا اور اپنے ہی دل میں بستا تھا۔ 

 ਤਉ ਸਗਨ ਅਪਸਗਨ ਕਹਾ ਬੀਚਾਰੈ ॥
ta-o sagan apasgan kahaa beechaarai.
then who considered omens to be good or bad?
ਤਦੋਂ ਚੰਗੇ ਮੰਦੇ ਸਗਨ ਕੌਣ ਸੋਚਦਾ ਸੀ?
تءُ سگن اپسگن کہا بیِچارےَ
سگن اپ سگن۔ نیک و بد علامات
تو نیک و بد علامات کی کون وچار یں کرتا تھا۔ 

 ਜਹ ਆਪਨ ਊਚ ਆਪਨ ਆਪਿ ਨੇਰਾ ॥
jah aapan ooch aapan aap nayraa.
When He Himself was the highest and Himself lower (in rank),
ਜਦੋਂ ਉਹ ਆਪ ਹੀ ਉੱਚਾ ਅਤੇ ਆਪ ਅਤੇ ਆਪ ਹੀ ਨੀਵਾਂ ਸੀ,
جہ آپن اۄُچ آپن آپِ نیرا
۔ اوچ۔ بلند۔ نیرا۔ نزدیک۔
جب آپ ہی نزدیک اور خود ہی اونچا تھا۔ 

 ਤਹ ਕਉਨ ਠਾਕੁਰੁ ਕਉਨੁ ਕਹੀਐ ਚੇਰਾ ॥
tah ka-un thaakur ka-un kahee-ai chayraa.
then who was the master, and who was the servant?
ਦੱਸੋ ਮਾਲਕ ਕੌਣ ਸੀ ਤੇ ਸੇਵਕ ਕੌਣ ਸੀ? 
تہ کئُن ٹھاکُرُ کئُنُ کہیِۓَ چیرا ۔ 
ٹھاکر۔ آقا۔ چیرا۔ شاگرد ۔
تب کون مالک کون خادم تھا۔ 

 ਬਿਸਮਨ ਬਿਸਮ ਰਹੇ ਬਿਸਮਾਦ ॥
bisman bisam rahay bismaad.
People are astounded by the amazing wonders of Your Creation.
ਜੀਵ ਤੇਰੀ ਗਤਿ ਭਾਲਦੇ ਹੈਰਾਨ ਤੇ ਅਚਰਜ ਹੋ ਰਹੇ ਹਨ 
بِسمن بِسم رہے بِسماد
بسمن۔ حیرانگی ۔ بسم۔ حیران۔ بسماد۔ حیرانگی کی حالت میں۔ گت۔
حیرانگی بھی حیران ہو رہی ہے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਅਪਨੀ ਗਤਿ ਜਾਨਹੁ ਆਪਿ ॥੫॥
 nanak apnee gat jaanhu aap. ||5||
Nanak says, O’ God only You know Your state
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਪ੍ਰਭੂ ਅੱਗੇ ਅਰਦਾਸ ਕਰ ਤੇ ਆਖਹੇ ਪ੍ਰਭੂ!) ਤੂੰ ਆਪਣੀ ਗਤਿ ਆਪ ਹੀ ਜਾਣਦਾ ਹੈਂ l
نانک اپنی گتِ جانہُ آپِ
اے نانک خدا اپنے متعلق خود ہی جانتا ہے ۔ 

 ਜਹ ਅਛਲ ਅਛੇਦ ਅਭੇਦ ਸਮਾਇਆ ॥
jah achhal achhayd abhayd samaa-i-aa.
When Undeceivable, Indestructible the Incomprehensible One was self-absorbed.
ਜਦੋਂ ਅਛੱਲ ਅਬਿਨਾਸੀ ਤੇ ਅਭੇਦ ਪ੍ਰਭੂ (ਆਪਣੇ ਆਪ ਵਿਚਟਿਕਿਆ ਹੋਇਆ ਸੀ,
جہ اچھل اچھید ابھید سمائِیا
اچھل ( جسے ) جس سے فریب نہ وہ سکے ۔ اچھید ۔ جسے ختم نہ کیا جا سکے ۔ ابھید۔ جسکاراز معلوم نہ ہو سکے ۔ سمائیا۔ موجود ہے ۔
جس لا فریب لا فناہ مخفی راز جس حالت میں بستا ہے ۔ 

 ਊਹਾ ਕਿਸਹਿ ਬਿਆਪਤ ਮਾਇਆ ॥
oohaa kiseh bi-aapat maa-i-aa.
then who was swayed by Maya (worldly distractions)?
ਓਥੇ ਕਿਸ ਨੂੰ ਮਾਇਆ ਪੋਹ ਸਕਦੀ ਸੀ ?
اۄُہا کِسہِ بِیاپت مائِیا
اوہا۔ اسے ۔ ویاپت ۔ اثر انداز ۔
 اسے کیسے دنیاوی مادیات ( مائیا) کسے اثر انداز ہوگی ۔

 ਆਪਸ ਕਉ ਆਪਹਿ ਆਦੇਸੁ ॥
aapas ka-o aapeh aadays.
When He paid homage to Himself,
ਜਦ ਖੁਦ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਹੀ ਨਮਸਕਾਰ ਕਰਦਾ ਸੀ,
آپس کءُ آپہِ آدیسُ
آویس۔ آداب۔ سجدہ ۔ سلام۔ نمسکار
خدا کو خود ہی اداب و سلام ۔ 

 ਤਿਹੁ ਗੁਣ ਕਾ ਨਾਹੀ ਪਰਵੇਸੁ ॥
tihu gun kaa naahee parvays.
then the three modes of Maya (power, vices and virtue) did not prevail.
ਤਦ (ਮਾਇਆ ਦੇਤਿੰਨੇ ਲੱਛਣ ਜੱਗ ਵਿੱਚ ਦਾਖਲ ਨਹੀਂ ਹੋਏ ਸਨ
تِہُ گُݨ کا ناہی پرویسُ
۔ پر ویس ۔ داخل ۔
دخل نہیں تینوں اوصافوں کا ۔ 

 ਜਹ ਏਕਹਿ ਏਕ ਏਕ ਭਗਵੰਤਾ ॥
jah aykeh ayk ayk bhagvantaa.
When there was only the One, Supreme God alone,
ਜਦੋਂ ਭਗਵਾਨ ਕੇਵਲ ਇਕ ਆਪ ਹੀ ਸੀ,
جہ ایکہِ ایک ایک بھگونّتا
بھگونتا۔ قسمت بنانے والا۔ خدا۔
جب واحد ہے واحد ہے خدا 

 ਤਹ ਕਉਨੁ ਅਚਿੰਤੁ ਕਿਸੁ ਲਾਗੈ ਚਿੰਤਾ ॥
tah ka-un achint kis laagai chintaa.
then who was not anxious, and who felt anxiety?
ਤਦੋਂ ਕੌਣ ਬੇਫ਼ਿਕਰ ਸੀ ਤੇ ਕਿਸ ਨੂੰ ਕੋਈ ਚਿੰਤਾ ਲੱਗਦੀ ਸੀ
تہ کئُنُ اچِنّتُ کِسُ لاگےَ چِنّتا ۔
اچنت۔ بیفکر۔ چنتا۔ فکر۔غم۔
تب بیفکر ہے کون اور فکر مند کون ہے 

 ਜਹ ਆਪਨ ਆਪੁ ਆਪਿ ਪਤੀਆਰਾ ॥
jah aapan aap aap patee-aaraa.
When only He Himself was there to please Him,
ਜਦੋਂ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਪਤਿਆਉਣ ਵਾਲਾ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਸੀ,
جہ آپن آپُ آپِ پتیِیارا
پتیارا۔ اطمینان ۔ تسلی ۔
۔ جب اسے اپنے آپ پر تسلی و اطمینان بھی ہے ۔ 

 ਤਹ ਕਉਨੁ ਕਥੈ ਕਉਨੁ ਸੁਨਨੈਹਾਰਾ ॥
tah ka-un kathai ka-un sunnaihaaraa.
then who was the speaker and who was the listener?
ਤਦੋਂ ਕੌਣ ਬੋਲਦਾ ਸੀਤੇ ਕੌਣ ਸੁਣਨ ਵਾਲਾ ਸੀ?
تہ کئُنُ کتھےَ کئُنُ سُننیَہارا 
کتھے ۔ کہنے والا۔ سننے ہار ۔ سننے والا۔
تب کون کرتا ہے بیان اور کون سنتا ہے ۔ 

 ਬਹੁ ਬੇਅੰਤ ਊਚ ਤੇ ਊਚਾ ॥
baho bay-ant ooch tay oochaa.
He is vastly infinite and the highest of the high.
ਪ੍ਰਭੂ ਬੜਾ ਬੇਅੰਤ ਹੈਸਭ ਤੋਂ ਉੱਚਾ ਹੈ, 
بہُ بیئنّت اۄُچ تے اۄُچا
بے انت۔ بیشمار۔
حد سے تجاوز کرتا بیشمار وہ ہے اور اونچوں سے بھی اونچا ہے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਆਪਸ ਕਉ ਆਪਹਿ ਪਹੂਚਾ ॥੬॥
naanak aapas ka-o aapeh pahoochaa. ||6||
O’ Nanak, He alone can fathom Himself.||6||
ਹੇ ਨਾਨਕਆਪਣੇ ਆਪ ਤਕ ਆਪ ਹੀ ਅੱਪੜਨ ਵਾਲਾ ਹੈ
نانک آپس کءُ آپہِ پہۄُچا
پہور چا۔ برابر
اے ناک اپنی نظر آپ خدا ہے اور وہ لاثانی ہے ۔ 

 ਜਹ ਆਪਿ ਰਚਿਓ ਪਰਪੰਚੁ ਅਕਾਰੁ ॥
jah aap rachi-o parpanch akaar.
When God fashioned this universe of visible form,
ਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪ ਜਗਤ ਦੀ ਖੇਡ ਰਚ ਦਿੱਤੀ,
جہ آپِ رچِئۄ پرپنّچُ اکارُ
پرپنچ۔ عالم۔ جہاں ۔ دنیا۔ رچیو۔ پیدا کی ۔ آکار۔ پھیلاؤ ۔
جب خدا عالم کو ظہور میں لائیا 

 ਤਿਹੁ ਗੁਣ ਮਹਿ ਕੀਨੋ ਬਿਸਥਾਰੁ ॥
tihu gun meh keeno bisthaar.
He made the world subject to the three modes of Maya (vice, virtue, and power).
ਤੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਤਿੰਨ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਖਿਲਾਰਾ ਖਲੇਰ ਦਿੱਤਾ
تِہُ گُݨ مہِ کیِنۄ بِستھارُ
اور اسمیں تین اوصاف رجو ۔ ستو ۔ طمع کا پھیلاو را چ کیا
تو تین اوصاف کا پھیلاؤ کیا۔ جو جھوٹا اور جھوٹ پھیلائیا ہے 

 ਪਾਪੁ ਪੁੰਨੁ ਤਹ ਭਈ ਕਹਾਵਤ ॥
paap punn tah bha-ee kahaavat.
Then the concept of sin and virtue came into existence.
ਤਦੋਂ ਇਹ ਗੱਲ ਚੱਲ ਪਈ ਕਿ ਇਹ ਪਾਪ ਹੈ ਇਹ ਪੁੰਨ ਹੈ,
پاپُ پُنّنُ تہ بھئی کہاوت
۔ پاپ۔ گناہ ۔ جرم۔ پن۔ ثواب ۔
۔ تینوں اوصاف پھیلے تو گناہ و ثواب اور نیکی ۔ بدی کا اذکار ہونے لگا