Urdu-Page-290

ਸੋ ਕਿਉ ਬਿਸਰੈ ਜਿਨਿ ਸਭੁ ਕਿਛੁ ਦੀਆ ॥
so ki-o bisrai jin sabh kichh dee-aa.
Why forget Him, who has given us everything?
ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਕਿਉਂ ਭੁੱਲ ਜਾਏ ਜਿਸ ਨੇ ਸਭ ਕੁਝ ਦਿੱਤਾ ਹੈ,
سۄ کِءُ بِسرےَ جِنِ سبھُ کِچھُ دیِیا
۔ اسے کہوں بھلائیں جس نے تمام نعمتیں عنایت کی ہیں

 ਸੋ ਕਿਉ ਬਿਸਰੈ ਜਿ ਜੀਵਨ ਜੀਆ ॥
so ki-o bisrai je jeevan jee-aa.
Why forget Him, who is the Life of the living beings?
ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਕਿਉਂ ਭੁੱਲ ਜਾਏ ਜੋ ਜੀਵਾਂ ਦੀ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦਾ ਆਸਰਾ ਹੈ?
سۄ کِءُ بِسرےَ جِ جیِون جیِیا
۔ جیون جیا۔ جو زندگی کے لئے آسرا ہے ۔ جس کے سہارے زندگی ہے ۔ جو زندگی کی جان ہے ۔
۔ اسے کیوں بھلائیا جو انسانی زندگی کی جان ہے ۔ 

 ਸੋ ਕਿਉ ਬਿਸਰੈ ਜਿ ਅਗਨਿ ਮਹਿ ਰਾਖੈ ॥
so ki-o bisrai je agan meh raakhai.
Why forget Him, who preserves us in the fire of the womb?
ਉਹ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਕਿਉਂ ਵਿਸਰ ਜਾਏ ਜੋ (ਮਾਂ ਦੇ ਪੇਟ ਦੀਅੱਗ ਵਿਚ ਬਚਾ ਕੇ ਰੱਖਦਾ ਹੈ?
سۄ کِءُ بِسرےَ جِ اگنِ مہِ راکھےَ
اگن میہہ راکھے ۔ جو آگ سے بچاتا ہے ۔
۔ اسے کیوں بھولیں جو آگ میں بھی بچاتا ہے 

 ਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ਕੋ ਬਿਰਲਾ ਲਾਖੈ ॥
gur parsaad ko birlaa laakhai.
Rare is the one who realizes this by the Guru’s Grace,
ਕੋਈ ਵਿਰਲਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ (ਇਹ ਗੱਲਸਮਝਦਾ ਹੈ
گُر پ٘رسادِ کۄ بِرلا لاکھےَ
گر پر ساد۔ رحمت مرشد سے ۔ ورلا۔ کوئی ہی ۔ لاکھے ۔ سمجھتا ہے
رحمت مرشد سے کوئی ہی اسے سمجھتا ہے 

 ਸੋ ਕਿਉ ਬਿਸਰੈ ਜਿ ਬਿਖੁ ਤੇ ਕਾਢੈ ॥
so ki-o bisrai je bikh tay kaadhai.
Why forget Him, who saves us from the poison of worldly illusions?.
ਉਹ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਕਿਉਂ ਭੁੱਲ ਜਾਏ ਜੋ (ਮਾਇਆਰੂਪਜ਼ਹਰ ਤੋਂ ਬਚਾਉਂਦਾ ਹੈ,
سۄ کِءُ بِسرےَ جِ بِکھُ تے کاڈھےَ
۔ وکھ ۔ زہر ۔ کاڈھے ۔ بچاتا ہے
۔ اسے کیوں بھلائیں جو دنیاوی دولت کی زہر سے بچاتاہے ۔ 

 ਜਨਮ ਜਨਮ ਕਾ ਟੂਟਾ ਗਾਢੈ ॥
janam janam kaa tootaa gaadhai.
and reunites with Him the mortal separated from Him for countless lifetimes?
ਅਤੇ ਕਈ ਜਨਮ ਦੇ ਵਿਛੁੜੇ ਹੋਏ ਜੀਵ ਨੂੰ (ਆਪਣੇ ਨਾਲਜੋੜ ਲੈਂਦਾ ਹੈ?
جنم جنم کا ٹۄُٹا گاڈھےَ
اور دیرینہ ٹوٹے ہوئے رشتوں کو جوڑتا ہے 

 ਗੁਰਿ ਪੂਰੈ ਤਤੁ ਇਹੈ ਬੁਝਾਇਆ ॥
gur poorai tat ihai bujhaa-i-aa.
The devotees, whom the perfect Guru has made to understand this essence,
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਸੇਵਕਾਂ ਨੂੰ ਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਨੇ ਇਹ ਗੱਲ ਸਮਝਾਈ ਹੈ,
گُرِ پۄُرےَ تتُ اِہےَ بُجھائِیا
گر پورے ۔ کامل مرشد نے ۔۔ تت۔ حقیقت ۔ اصلیت ۔
۔ کامل مرشد نے یہ اصلیت سمجھائی ہے

 ਪ੍ਰਭੁ ਅਪਨਾ ਨਾਨਕ ਜਨ ਧਿਆਇਆ ॥੪॥
parabh apnaa naanak jan Dhi-aa-i-aa. ||4|||
O’ Nanak, they have meditated on their Master with love and devotion.
ਹੇ ਨਾਨਕਉਹਨਾਂ ਨੇ ਆਪਣੇ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਿਮਰਿਆ ਹੈ
پ٘ربھُ اپنا نانک جن دھِیائِیا
جن۔ خادم۔ دھیائیا۔ یاد کیا۔
۔ اے خادم نانک ۔ جس نے اپنے خدا میں دھیان لگایا ہے

 ਸਾਜਨ ਸੰਤ ਕਰਹੁ ਇਹੁ ਕਾਮੁ ॥
 saajan sant karahu ih kaam.
O’ my Saintly friends, take up this task,
ਹੇ ਸੱਜਣ ਜਨੋਹੇ ਸੰਤ ਜਨੋਇਹ ਕੰਮ ਕਰੋ,
ساجن سنّت کرہُ اِہُ کامُ
ساجن۔ دوست ۔ سنت ۔پاکدامن خدا رسیدہ عارف۔
اے عارف دوستوں یہ کام کرؤ۔ 

 ਆਨ ਤਿਆਗਿ ਜਪਹੁ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ॥
 aan ti-aag japahu har naam.
of meditating on God’s Name and renounce all other ritualistic practices.
ਹੋਰ ਸਾਰੇ (ਆਹਰਛੱਡ ਕੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਜਪਹੁ;
آن تِیاگِ جپہُ ہرِ نامُ
آن۔ دیگر۔ دوسرے ۔ تیاگ چھوڑ کر ۔ ترک کرکے
دوسرے تمام کام چھوڑ کر خدا کو یاد کرؤ 

 ਸਿਮਰਿ ਸਿਮਰਿ ਸਿਮਰਿ ਸੁਖ ਪਾਵਹੁ ॥
simar simar simar sukh paavhu.
Constantly meditate on God’s Name and enjoy the taste of bliss.
ਸਦਾ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰੋ ਤੇ ਸਿਮਰ ਕੇ ਸੁਖ ਹਾਸਲ ਕਰੋ;
سِمرِ سِمرِ سِمرِ سُکھ پاوہُ
۔ اسکی یاد سےسکھ پاؤگے۔ 

 ਆਪਿ ਜਪਹੁ ਅਵਰਹ ਨਾਮੁ ਜਪਾਵਹੁ ॥
aap japahu avrah naam japaavhu.
Meditate on Naam yourself and inspire others to do the same.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਆਪ ਜਪਹੁ ਤੇ ਹੋਰਨਾਂ ਨੂੰ ਭੀ ਜਪਾਵਹੁ
آپِ جپہُ اورہ نامُ جپاوہُ
خود الہٰی نام کی ریاض کرؤ اور دوسروں سے کراؤ

 ਭਗਤਿ ਭਾਇ ਤਰੀਐ ਸੰਸਾਰੁ ॥
bhagat bhaa-ay taree-ai sansaar.
By loving devotional worship, one crosses the world-ocean of vices.
ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਭਗਤੀ ਵਿਚ ਨਿਹੁਂ ਲਾਇਆਂ ਇਹ ਸੰਸਾਰ (ਸਮੁੰਦਰਤਰੀਦਾ ਹੈ,
بھگتِ بھاءِ تریِۓَ سنّسارُ
بھگت بھائے ۔ عشق الہٰی کے پریم سے ۔ ترییئے سنسار ۔ اس عالم میں کامیابی ملتی ہے
۔ الہٰی پریم پیار سے دنیا میں کامیابیاں نصیب ہوتی ہیں۔ 

 ਬਿਨੁ ਭਗਤੀ ਤਨੁ ਹੋਸੀ ਛਾਰੁ ॥
bin bhagtee tan hosee chhaar.
Consider this human body wasted if there is no devotional worship of God.
ਭਗਤੀ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਇਹ ਸਰੀਰ ਕਿਸੇ ਕੰਮ ਨਹੀਂ 
بِنُ بھگتی تنُ ہۄسی چھارُ
۔ اوریہہ۔ ۔دوسروں کو ۔ ۔ چھار۔ راکھ ۔ سوآہ ۔
بغیر الہٰی پریم پیار کے اس جسم نے مٹی میں مل جانا ہے خاک بن جانا ہے ۔ 

 ਸਰਬ ਕਲਿਆਣ ਸੂਖ ਨਿਧਿ ਨਾਮੁ ॥
sarab kali-aan sookh niDh naam.
Naam is the treasure of all good fortune and peace.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਭਲੇ ਭਾਗਾਂ ਤੇ ਸਾਰੇ ਸੁਖਾਂ ਦਾ ਖ਼ਜ਼ਾਨਾ ਹੈ,
سرب کلِیاݨ سۄُکھ نِدھِ نامُ
کلیان ۔ خوشحالی ۔ ندھ نام۔ نام کے خزانے سے
تمام خوشحالی اور آرام نام کے خزانے سے ہے ۔ 

 ਬੂਡਤ ਜਾਤ ਪਾਏ ਬਿਸ੍ਰਾਮੁ ॥
boodat jaat paa-ay bisraam.
Even the one drowning in vices, gets saved by meditating on Naam.
ਨਾਮ ਜਪਿਆਂ ਵਿਕਾਰਾਂ ਵਿਚ ਡੁੱਬਦੇ ਜਾਂਦੇ ਨੂੰ ਆਸਰਾ ਟਿਕਾਣਾ ਮਿਲਦਾ ਹੈ;
بۄُڈت جات پاۓ بِس٘رامُ
۔ بوڈت ۔ جات ۔ ڈوبتے کو ۔ وسرام۔ آرام۔ ٹھکانہ
اور ڈوبتے انسان آرام نام کے خزانے سے ہے ۔ اور ڈوبتے انسان کے لئے سہارا اور ٹھکانہ ہے ۔ 

 ਸਗਲ ਦੂਖ ਕਾ ਹੋਵਤ ਨਾਸੁ ॥
sagal dookh kaa hovat naas.
All sorrows vanish by remembering God.
ਨਾਮ ਜਪਿਆਂ ਸਾਰੇ ਦੁੱਖਾਂ ਦਾ ਨਾਸ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
سگل دۄُکھ کا ہۄوت ناسُ
تاکہ تمام عذاب مٹ جائیں۔

 ਨਾਨਕ ਨਾਮੁ ਜਪਹੁ ਗੁਨਤਾਸੁ ॥੫॥
naanak naam japahu guntaas. ||5||
Therefore, O’ Nanak, meditate on the Naam, the treasure of virtues.
(ਤਾਂ ਤੇਹੇ ਨਾਨਕਨਾਮ ਜਪਹੁ, (ਨਾਮ ਹੀਗੁਣਾਂ ਦਾ ਖ਼ਜ਼ਾਨਾ (ਹੈ)
نانک نامُ جپہُ گُنتاسُ
۔ گن تاس۔ اوصاف کا خزانہ ۔
اے نانک۔ نام کو خدا کو یاد کرؤ ۔ جو اوصاف کا خزانہ ہے ۔ 

 ਉਪਜੀ ਪ੍ਰੀਤਿ ਪ੍ਰੇਮ ਰਸੁ ਚਾਉ ॥
upjee pareet paraym ras chaa-o.
The one in whom has welled up love, affection and yearning for God,
(ਜਿਸ ਦੇ ਅੰਦਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀਪ੍ਰੀਤ ਪੈਦਾ ਹੋਈ ਹੈਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਪਿਆਰ ਦਾ ਸੁਆਦ ਤੇ ਚਾਉ ਪੈਦਾ ਹੋਇਆ ਹੈ, 
اُپجی پ٘ریِتِ پ٘ریم رسُ چاءُ
اپجی ۔ پیدا ہوئی ۔ پریت۔ پیار۔ پریم رس۔ پیار کا لطف۔ چاو۔ خوشی ۔
دوستی ۔ پیار ۔ پیار کا لطف اور شوق پیدا ہوا 

 ਮਨ ਤਨ ਅੰਤਰਿ ਇਹੀ ਸੁਆਉ ॥
man tan antar ihee su-aa-o.
desires only this gift of Naam.
ਉਸ ਦੇ ਮਨ ਤੇ ਤਨ ਵਿਚ ਇਹੀ ਚਾਹ ਹੈ (ਕਿ ਨਾਮ ਦੀ ਦਾਤ ਮਿਲੇ)
من تن انّترِ اِہی سُیاءُ
سوآؤ۔ مقصد۔ مدعا۔
۔ دل و جان میں یہی چاہ اور خواہش ہے 

 ਨੇਤ੍ਰਹੁ ਪੇਖਿ ਦਰਸੁ ਸੁਖੁ ਹੋਇ ॥
naytarahu paykh daras sukh ho-ay.
Beholding His Blessed Vision (following Guru’s advice), he feels blessed.
ਅੱਖਾਂ ਨਾਲ ਗੁਰੂ ਦਾ ਦੀਦਾਰ ਕਰ ਕੇ ਉਸ ਨੂੰ ਸੁਖ ਹੁੰਦਾ ਹੈ l 
نیت٘رہُ پیکھِ درسُ سُکھُ ہۄءِ
نیتر پیکھ ۔ آنکھون سے دیکھ کر۔ درس دیدار ۔ درشن۔
۔ آنکھوں سے دیدار کرکے آرام محسوس ہوا۔ 

 ਮਨੁ ਬਿਗਸੈ ਸਾਧ ਚਰਨ ਧੋਇ ॥
man bigsai saaDh charan Dho-ay.
His mind blossoms in ecstasy by sincerely following the teachings of the Guru.
ਗੁਰੂ ਦੇ ਚਰਨ ਧੋ ਕੇ ਉਸ ਦਾ ਮਨ ਖਿੜ ਆਉਂਦਾ ਹੈ 
منُ بِگسےَ سادھ چرن دھۄءِ
من وگسے ۔ من کھلتا ہے ۔ خوش ہوتا ہے ۔ سادھ چرن دہوئے ۔ پائے پاکدامن صاف کرکے
پائے پاکدامن دھونے سے دل کھلتا ہے 

 ਭਗਤ ਜਨਾ ਕੈ ਮਨਿ ਤਨਿ ਰੰਗੁ ॥
bhagat janaa kai man tan rang.
The mind and body of God’s devotees are infused with His Love.
ਭਗਤਾਂ ਦੇ ਮਨ ਤੇ ਸਰੀਰ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਪਿਆਰ ਟਿਕਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ,
بھگت جنا کےَ منِ تنِ رنّگُ
۔ من تن رنگ۔ دل و جان سے پیار
۔ عارفان الہٰی کے دل وجان میں پریم ہے پیار ہے ۔ 

 ਬਿਰਲਾ ਕੋਊ ਪਾਵੈ ਸੰਗੁ ॥
birlaa ko-oo paavai sang.
Rare is the one who joins the company of such devotees of God.
ਕਿਸੇ ਵਿਰਲੇ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲੇ ਨੂੰ ਉਹਨਾਂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਨਸੀਬ ਹੁੰਦੀ ਹੈ 
بِرلا کۄئۄُ پاوےَ سنّگُ
۔ برلا۔ کوئی ۔ سنگ۔ ساتھ ۔ دست اشیا۔
کسی کو ہی ان کی صحبت و قربت نصیب ہوتی ہے ۔

 ਏਕ ਬਸਤੁ ਦੀਜੈ ਕਰਿ ਮਇਆ ॥
ayk basat deejai kar ma-i-aa.
O’ God, mercifully bless us with this one gift,
(ਹੇ ਪ੍ਰਭੂ!) ਇਕ ਨਾਮਵਸਤੂ ਮੇਹਰ ਕਰ ਕੇ ਸਾਨੂੰ ਦੇਹ,
ایک بستُ دیِجےَ کرِ مئِیا
میا۔ مہربانی۔
مہربانی کرکے اپنی عنایت و شفقت سے ایک اشیا دیجیئے ۔ 

 ਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ਨਾਮੁ ਜਪਿ ਲਇਆ ॥
gur parsaad naam jap la-i-aa.
so that by Guru’s Grace, we may be able to meditate on Your Name.
ਤਾਂ ਜੋ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਤੇਰਾ ਨਾਮ ਜਪ ਸਕੀਏ
گُر پ٘رسادِ نامُ جپِ لئِیا
گر پر ساد ۔ رحمت مرشد ۔
رحمت مرشد سے تیرا نام اے خدا یا کر سکیں۔ 

 ਤਾ ਕੀ ਉਪਮਾ ਕਹੀ ਨ ਜਾਇ ॥
taa kee upmaa kahee na jaa-ay.
His greatness cannot be described;
ਉਸ ਦੀ ਵਡਿਆਈ ਬਿਆਨ ਨਹੀਂ ਕੀਤੀ ਜਾ ਸਕਦੀ
تا کی اُپما کہی ن جاءِ
اپما۔ تعریف۔ عظمت ۔
اس کی عظمت بیان سے باہر ہے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਰਹਿਆ ਸਰਬ ਸਮਾਇ ॥੬॥
naanak rahi-aa sarab samaa-ay. ||6||
O’ Nanak, He is all pervading.
ਹੇ ਨਾਨਕਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਸਭ ਥਾਈਂ ਮੌਜੂਦ ਹੈ
نانک رہِیا سرب سماءِ
سرب سمائے ۔ سب میں بستا ہے ۔
اے نانک۔ وہ سب میں بستا ہے ۔ 

 ਪ੍ਰਭ ਬਖਸੰਦ ਦੀਨ ਦਇਆਲ ॥
parabh bakhsand deen da-i-aal.
O’ all forgiving and merciful God of the meek,
ਹੇ ਬਖ਼ਸ਼ਨਹਾਰ ਪ੍ਰਭੂਹੇ ਗਰੀਬਾਂ ਤੇ ਤਰਸ ਕਰਨ ਵਾਲੇ!
پ٘ربھ بخشنّد دیِن دئِیال ۔
بخشند۔ بخشنے والا۔ معاف کردینے والا۔ دین۔ غریب۔ بے زر ۔ کنگال
اے بخشنے والے غریبوں ناتوانوں پر تس کرنے والے غریب نواز مہربان 

 ਭਗਤਿ ਵਛਲ ਸਦਾ ਕਿਰਪਾਲ ॥
bhagat vachhal sadaa kirpaal.
O’ lover of meditation and ever merciful,
ਹੇ ਭਗਤੀ ਨਾਲ ਪਿਆਰ ਕਰਨ ਵਾਲੇਹੇ ਸਦਾ ਦਇਆ ਦੇ ਘਰ ਪ੍ਰ
بھگتِ وچھل سدا کِرپال
۔ بھگت و چھل۔ عابدون سے پیار کرنے والا۔ کرپال۔ مہربان
 ۔ عابدان الہٰی سے پیار کرنے والے اور صدیوی مہربان ۔ 
!

 ਅਨਾਥ ਨਾਥ ਗੋਬਿੰਦ ਗੁਪਾਲ ॥
anaath naath gobind gupaal.
O’ the support of the support-less, protector of the world.
ਹੇ ਅਨਾਥਾਂ ਦੇ ਨਾਥਹੇ ਗੋਬਿੰਦਹੇ ਗੋਪਾਲ!
اناتھ ناتھ گۄبِنّد گُپال
۔ اناتھ۔ بے مالک۔ ناتھ ۔ مالک۔ گوبند۔ عالم کے مالک۔
 بے مالکون کے مالک گو بند گوپال۔ 

 ਸਰਬ ਘਟਾ ਕਰਤ ਪ੍ਰਤਿਪਾਲ ॥
sarab ghataa karat partipaal.
O’ the sustainer of all beings.
ਹੇ ਸਾਰੇ ਸਰੀਰਾਂ ਦੀ ਪਾਲਣਾ ਕਰਨ ਵਾਲੇ
سرب گھٹا کرت پ٘رتِپال ۔
پرتپال۔ پرورش کرنے والا۔ سرب گھٹا۔ سارے دل 
سب کی پرورش کرنے والے 

 ਆਦਿ ਪੁਰਖ ਕਾਰਣ ਕਰਤਾਰ ॥
aad purakh kaaran kartaar.
O’ the Primal Being, O’ the Creator of the universe.
ਹੇ ਸਭ ਦੇ ਮੁੱਢ ਤੇ ਸਭ ਵਿੱਚ ਵਿਆਪਕ ਪ੍ਰਭੂਹੇ (ਜਗਤ ਦੇਮੂਲਹੇ ਕਰਤਾਰ!
آدِ پُرکھ کارݨ کرتار
آو پرکھ ۔ سب سے اول ۔ کارن ۔ سبب ۔ کرتار۔ کرنے والا۔
 سب سے اول ہستی سبب اور کارن کے کرنے والے 

 ਭਗਤ ਜਨਾ ਕੇ ਪ੍ਰਾਨ ਅਧਾਰ ॥
bhagat janaa kay paraan aDhaar.
O’ the Support of life of the devotees.
ਹੇ ਭਗਤਾਂ ਦੀ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦੇ ਆਸਰੇ
بھگت جنا کے پ٘ران ادھار
بھگت ۔ الہٰی پریمی ۔ حنا۔ الہٰی خادم۔ پران۔ زندگی ۔ آدھار۔ آسرا
 اور الہٰی پریمیوں سے پیار کرنے والے اور زندگی کے سہارے 

 ਜੋ ਜੋ ਜਪੈ ਸੁ ਹੋਇ ਪੁਨੀਤ ॥ 
jo jo japai so ho-ay puneet
Whoever meditates on You is sanctified,
ਜੋ ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਤੈਨੂੰ ਜਪਦਾ ਹੈਉਹ ਪਵ੍ਰਿੱਤ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
جۄ جۄ جپےَ سُ ہۄءِ پُنیِت
۔ پنیت۔ پاک ۔ مقدس۔
جو تجھے یاد کرتا ہے ۔ پاک اور مقدس ہوجاتا ہے ۔

 ਭਗਤਿ ਭਾਇ ਲਾਵੈ ਮਨ ਹੀਤ ॥
bhagat bhaa-ay laavai man heet.
while focusing the mind in loving devotional worship.
ਭਗਤੀਭਾਵ ਨਾਲ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਤੇਰਾ ਪਿਆਰ ਟਿਕਾਉਂਦਾ ਹੈ (ਉਸ ਦਾ ਉਧਾਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ) 
بھگتِ بھاءِ لاوےَ من ہیِت
ہیت پیار۔
عبادت سے پریم کرنے والے اسے من سے پریم کرتے ہین

 ਹਮ ਨਿਰਗੁਨੀਆਰ ਨੀਚ ਅਜਾਨ ॥ 
ham nirgunee-aar neech ajaan. 
we are meritless, ignorant, and malicious,
 ਅਸੀਂ ਨੀਚ ਹਾਂਅੰਞਾਣ ਹਾਂ ਤੇ ਗੁਣਹੀਨ ਹਾਂ,
ہم نِرگُنیِیار نیِچ اجان
نرگنیار۔ بے اوصاف۔ نیچ ۔ کمینے ۔ اجان۔ بے سمجھ ۔
۔ مگر ہم بے اوصاف کمینے اور بے سمجھ ہیں

 ਨਾਨਕ ਤੁਮਰੀ ਸਰਨਿ ਪੁਰਖ ਭਗਵਾਨ ॥੭॥
naanak tumree saran purakh bhagvaan. ||7||
O’ Nanak, pray and say, O’ God, we have come to Your sanctuary. ||7||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਬੇਨਤੀ ਕਰ ਤੇ ਆਖ-) ਹੇ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖਹੇ ਭਗਵਾਨਅਸੀਂ ਤੇਰੀ ਸਰਨ ਆਏ ਹਾਂ
نانک تُمری سرنِ پُرکھ بھگوان ۔
پرکھ ۔ بھگوان ۔ خدا۔
 ۔ اے نانک۔ ہم الہٰی سایہ میں آئے ہیں۔

 ਸਰਬ ਬੈਕੁੰਠ ਮੁਕਤਿ ਮੋਖ ਪਾਏ ॥ 
sarab baikunth mukat mokh paa-ay. v
Consider one has received all the the heavenly comforts, liberation from vices and deliverance from cycles of birth and death,
 ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ (ਮਾਨੋਸਾਰੇ ਸੁਰਗ ਤੇ ਮੋਖ ਮੁਕਤੀ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲਏ ਹਨ,

 
سرب بیَکُنّٹھ مُکتِ مۄکھ پاۓ
ویکنٹھ ۔ جنت۔ بشہت۔ مکت۔ نجات۔ چھٹکارا۔ موکھ ۔ نجات۔
جنت۔ ذہنی آزادی اور بدیوں سے چھٹکارا پائیگا


ਏਕ ਨਿਮਖ ਹਰਿ ਕੇ ਗੁਨ ਗਾਏ ॥
ayk nimakh har kay gun gaa-ay.
if one has sung the praises of God even for an instant.
ਜਿਸ ਨੇ ਅੱਖ ਦਾ ਇਕ ਫੋਰ ਮਾਤ੍ਰ ਭੀ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣ ਗਾਏ ਹਨ
ایک نِمکھ ہرِ کے گُن گاۓ
ایک نمکھ ۔ ایک آنکھ جھپکنے کی دیر میں۔
جس انسان نے آنکھ جھپکنے کی دیر کے لئے کی ہےحمدوثنائے خدا۔ 

 ਅਨਿਕ ਰਾਜ ਭੋਗ ਬਡਿਆਈ ॥ 
anik raaj bhog badi-aa-ee. 
Consider one has received the powe of countless kingdoms, pleasures, and glory.
انِک راج بھۄگ بڈِیائی
راج ۔ حکومت۔ بھوگ۔ نعمتین۔ وڈیائی ۔ شہرت و عظمت
۔ اس نے حکومت عظمت شہرت حشمت شان و شوکت پائی ہے ۔

 ਹਰਿ ਕੇ ਨਾਮ ਕੀ ਕਥਾ ਮਨਿ ਭਾਈ ॥
har kay naam kee kathaa man bhaa-ee.
who loves to sing the praises of God.
ਜਿਸ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਦੀ ਗੱਲਬਾਤ ਮਿੱਠੀ ਲੱਗੀ ਹੈ
ہرِ کے نام کی کتھا منِ بھائی
۔ کتھا ۔ کہانی ۔
۔ اے انسان اگر الہٰی نا م کی کتھا کہانی تیرے دل کو پیاری ہے 

 ਬਹੁ ਭੋਜਨ ਕਾਪਰ ਸੰਗੀਤ ॥ 
baho bhojan kaapar sangeet
Consider one has received all the worldly pleasure of beautiful clothes, tasty foods and soothing music
 ਉਸ ਨੂੰ (ਮਾਨੋਕਈ ਕਿਸਮ ਦੇ ਖਾਣੇ ਕੱਪੜੇ ਤੇ ਰਾਗਰੰਗ ਹਾਸਲ ਹੋ ਗਏ ਹਨ 
بہُ بھۄجن کاپر سنّگیِت
بھوجن۔ کھانے ۔ کاپر ۔ کپڑے ۔ سنگیت ۔ گانے ۔
سمجھو اس نے کھانے کپڑے اور میتھے گانے ہیں

 ਰਸਨਾ ਜਪਤੀ ਹਰਿ ਹਰਿ ਨੀਤ ॥
rasnaa japtee har har neet.
 who always remembers God and utters God’s Name.
ਜਿਸ ਦੀ ਜੀਭ ਸਦਾ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਜਪਦੀ ਹੈ
رسنا جپتی ہرِ ہرِ نیِت
رسنا۔ زبان ۔ نیت۔ ہر روز ۔
جو انسان زباں سے نام خدا کا لیتا ہےہر روز۔ 

 ਭਲੀ ਸੁ ਕਰਨੀ ਸੋਭਾ ਧਨਵੰਤ ॥ 
bhalee so karnee sobhaa Dhanvant.
بھلی سُ کرنی سۄبھا دھنونّت
۔ بھلی ۔ سوکرنی ۔ وہ اعمال نیک اور اچھے ہین۔ سوبھا۔ شہرت دھنونت ۔ مالدار۔ دولتمند 
اسکا ہی اخلاق ہے اچھا اچھا بیو ہار بھی ہے ۔ اسکا اچھے ہین اعمال نیک شہرت ہے سرمایہ دار بھی ہے

 ਹਿਰਦੈ ਬਸੇ ਪੂਰਨ ਗੁਰ ਮੰਤ ॥
 hirdai basay pooran gur mant.
in whose heart dwells Guru’s teachings.
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਦਾ ਉਪਦੇਸ਼ ਵੱਸਦਾ ਹੈ
ہِردےَ بسے پۄُرن گُر منّت
۔ ہردے ۔ دل میں ۔ گرمت ۔ سبق مرشد۔
۔ جس کے دلمیں سبق کامل مرشد بستا ہے ۔ 

 ਸਾਧਸੰਗਿ ਪ੍ਰਭ ਦੇਹੁ ਨਿਵਾਸ ॥
saaDhsang parabh dayh nivaas.
O God, grant me a place in the Company of the Holy.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਆਪਣੇ ਸੰਤਾਂ ਦੀ ਸੰਗਤ ਵਿਚ ਥਾਂ ਦੇਹ l
سادھسنّگِ پ٘ربھ دیہُ نِواس
سادھ سنگ۔ صحبت پاکدامن ۔ نواس۔ قربت ۔ ٹھکانہ
۔ اے خدا مجھے عارفوں پاکدامنوں کی صحبت و قربت عنایت فرما 

 ਸਰਬ ਸੂਖ ਨਾਨਕ ਪਰਗਾਸ ॥੮॥੨੦॥
sarab sookh naanak pargaas. ||8||20||
O’ Nanak, by abiding in whose company, all comforts become manifest |20||
ਹੇ ਨਾਨਕਸਤਸੰਗ ਵਿਚ ਰਿਹਾਂ ਸਾਰੇ ਸੁਖਾਂ ਦਾ ਪ੍ਰਕਾਸ਼ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ l
سرب سۄُکھ نانک پرگاس
۔ سرب سوکھ ۔ ہر طرح کے آرام وآسائش ۔ پر گاس۔ ذہنی روشنی
۔ اے نانک۔ یہی سب سکھوں کا منبع ہے اسی سے ذہنی جہالت کا وتا دور اندھیرا ہے ۔

 ਸਲੋਕੁ ॥
salok.
سلۄکُ:
 ਸਰਗੁਨ ਨਿਰਗੁਨ ਨਿਰੰਕਾਰ ਸੁੰਨ ਸਮਾਧੀ ਆਪਿ ॥
sargun nirgun nirankaar sunn samaaDhee aap.
The formless God Himself is the one who possesses all attributes and no attributes. He Himself remains in absolute meditation.
ਨਿਰੰਕਾਰ ( ਆਕਾਰਰਹਿਤ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖਤ੍ਰਿਗੁਣੀ ਮਾਇਆ ਦਾ ਰੂਪ (ਭਾਵਜਗਤ ਰੂਪਭੀ ਆਪ ਹੈ ਤੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਤਿੰਨਾਂ ਗੁਣਾਂ ਤੋਂ ਪਰੇ ਭੀ ਆਪ ਹੀ ਹੈਅਫੁਰ ਅਵਸਥਾ ਵਿਚ ਟਿਕਿਆ ਹੋਇਆ ਭੀ ਆਪ ਹੀ ਹੈ
سرگُن نِرگُن نِرنّکار سُنّن سمادھی آپِ
سرگن۔ سب اوصافوں والا جس مین ہیں سب اوصاف اور سب اوصافوں کا مالک ہے ۔ نرگن۔ جس میں نہیں کوئی اوصاف اور واحد ہے ۔ نرنکار۔ جسکا نیں کوئی تن بدن اور بے حجم ہے وہ سن سمادھی ۔ جو و احد ہے وحدت میں ہے نہ ہی کوئی سنگی سا تھی ہے ۔
سب گن والا ہوتے ہوئے بھی بلا اوصاف ہے وہ بلاحجم و آکار ہوتے ہوئے بھی جسموں اور آکارون والا ہے 

 ਆਪਨ ਕੀਆ ਨਾਨਕਾ ਆਪੇ ਹੀ ਫਿਰਿ ਜਾਪਿ ॥੧॥
aapan kee-aa naankaa aapay hee fir jaap. ||1||
O’ Nanak, He Himself has created this universe and through His creation He meditates on Himself. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਇਹ ਸਾਰਾ ਜਗਤ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪ ਹੀ ਰਚਿਆ ਹੈ ਤੇ ਜੀਵਾਂ ਵਿਚ ਬੈਠ ਕੇ ਆਪ ਹੀ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਯਾਦ ਕਰ ਰਿਹਾ ਹੈ
آپے ہی پھِرِ جاپِ آپن کیِیا نانکا آپن کیِیا نانکا
آپن کیا۔ جس نے خو د عالم بنائیا ہے ۔ خو دہی یاد کرتا ہے اسے ۔
۔ واحد ہے کو دہی مجذوب ہے ۔ خود ہی پیدا کرکے اپنے کئے ہوئے کو یاد کرتا ہے وہ ۔ 

 ਅਸਟਪਦੀ ॥
asatpadee.
Ashtapadee:
اسٹپدی
 ਜਬ ਅਕਾਰੁ ਇਹੁ ਕਛੁ ਨ ਦ੍ਰਿਸਟੇਤਾ ॥
jab akaar ih kachh na daristaytaa.
When this world had not yet appeared in any visible form,
ਜਦੋਂ ਜਗਤ ਦੇ ਜੀਆਂ ਦੀ ਅਜੇ ਕੋਈ ਸ਼ਕਲ ਹੀ ਨਹੀਂ ਦਿੱਸਦੀ ਸੀ
جب اکارُ اِہُ کچھُ ن د٘رِسٹیتا
اکار۔ جسم۔ حجم۔ درسٹتا۔ دکھائی دیتا ۔
جب دنیا میں کوئی شکل وصورت اور جسم نہ تھے دیکھنے میں 

 ਪਾਪ ਪੁੰਨ ਤਬ ਕਹ ਤੇ ਹੋਤਾ ॥
paap punn tab kah tay hotaa.
who then committed sins and performed good deeds?
ਤਦੋਂ ਪਾਪ ਜਾਂ ਪੁੰਨ ਕਿਸ (ਜੀਵਤੋਂ ਹੋ ਸਕਦਾ ਸੀ?
پاپ پُنّن تب کہ تے ہۄتا 
کہہ تے ۔ کس کے ساتھ۔
تو گناہ ظور میں نہ تھی و ثواب جائز نا جائز کس کے ساتھ ہوتے 

 ਜਬ ਧਾਰੀ ਆਪਨ ਸੁੰਨ ਸਮਾਧਿ ॥
jab Dhaaree aapan sunn samaaDh.
When the God Himself was in profound meditation,
ਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪ ਅਫੁਰ ਅਵਸਥਾ ਵਾਲੀ ਸਮਾਧੀ ਲਾਈ ਹੋਈ ਸੀ
جب دھاری آپن سُنّن سمادھِ
سن سمادھ ۔ خدا کی وہ حالت جب خدا سکان بے حس و حرکت تھا اور عالم نہ تھا
۔ جب خدا سکتے و خاموشی و خوئش دھیان میں تھا خدا 

 ਤਬ ਬੈਰ ਬਿਰੋਧ ਕਿਸੁ ਸੰਗਿ ਕਮਾਤਿ ॥
tab bair biroDh kis sang kamaat.
then against whom were hate and jealousy directed?
ਤਦੋਂ (ਕਿਸ ਨੇਕਿਸੇ ਨਾਲ ਵੈਰਵਿਰੋਧ ਕਮਾਉਣਾ ਸੀ
تب بیَر بِرۄدھ کِسُ سنّگِ کماتِ ۔
۔ و یر برودھ ۔ تو دشمنی اور جھگڑا ۔
تو کس کے ساتھ دشمنی اور جھگڑے ہوتے ۔ 

 ਜਬ ਇਸ ਕਾ ਬਰਨੁ ਚਿਹਨੁ ਨ ਜਾਪਤ ॥
jab is kaa baran chihan na jaapat.
When there was no color or shape of this world to be seen,
ਜਦੋਂ ਇਸ (ਜਗਤਦਾ ਕੋਈ ਰੰਗਰੂਪ ਹੀ ਨਹੀਂ ਸੀ ਦਿੱਸਦਾ
جب اِس کا برنُ چِہنُ ن جاپت
درن چہن ۔ شکل وصورت ۔ رنگ و نسل۔ جاپت۔ پتہ نہیں تھا۔
جب خدا کی کوئی شکل و صورت کا پتہ تک نہ تھا,

 ਤਬ ਹਰਖ ਸੋਗ ਕਹੁ ਕਿਸਹਿ ਬਿਆਪਤ ॥
tab harakh sog kaho kiseh bi-aapat.
then who experienced joy and sorrow?
ਤਦੋਂ ਦੱਸੋ ਖ਼ੁਸ਼ੀ ਜਾਂ ਚਿੰਤਾ ਕਿਸ ਨੂੰ ਪੋਹ ਸਕਦੇ ਸਨ?
تب ہرکھ سۄگ کہُ کِسہِ بِیاپت ۔
ہرکھ سوگ۔ غمی ۔ خوشی۔ بیاپت۔ پتہ نہیں تھا۔ ۔ درتیجا ۔ برتائیاں۔
تب غمی اور خوشی کسے اور کیسے ہوتی ۔ 

 ਜਬ ਆਪਨ ਆਪ ਆਪਿ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ॥
jab aapan aap aap paarbarahm.
When the Supreme God was alone by Himself,
ਜਦੋਂ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਕੇਵਲ ਆਪ ਹੀ ਆਪ ਸੀ
جب آپن آپ آپِ پارب٘رہم
۔ جب خدا واحد تھا اور کچھ نہ تھا,

 ਤਬ ਮੋਹ ਕਹਾ ਕਿਸੁ ਹੋਵਤ ਭਰਮ ॥
tab moh kahaa kis hovat bharam.
then where was emotional attachment, and who had doubts?
ਤਦੋਂ ਮੋਹ ਕਿਥੇ ਹੋ ਸਕਦਾ ਸੀਤੇ ਭਰਮਭੁਲੇਖੇ ਕਿਸ ਨੂੰ ਹੋ ਸਕਦੇ ਸਨ?
تب مۄہ کہا کِسُ ہۄوت بھرم ۔
تو محبت اور وہم گمان بھی نہ تھا