Urdu-Page-287

ਅਪਨੀ ਕ੍ਰਿਪਾ ਜਿਸੁ ਆਪਿ ਕਰੇਇ ॥ 
apnee kirpaa jis aap karay-i.
Upon whom God shows His grace.
ਜਿਸ ਤੇ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪਣੀ ਮੇਹਰ ਕਰਦਾ ਹੈ l 
اپنی ک٘رِپا جِسُ آپِ کرےءِ
جس پر خدا کی رحمت ہوگی اور خدا اپنا رحم فرمائیگا۔

 ਨਾਨਕ ਸੋ ਸੇਵਕੁ ਗੁਰ ਕੀ ਮਤਿ ਲੇਇ ॥੨॥
 nanak so sevak gur kee mat lay-ay. ||2||
O’ Nanak, only that devotee seeks the Guru’s teachings. ||2||
ਹੇ ਨਾਨਕਉਹ ਸੇਵਕ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਸਿੱਖਿਆ ਲੈਂਦਾ ਹੈ
نانک سۄ سیوکُ گُر کی متِ لےءِ
اے نانک۔ اپنے مرشد سے شاگرد و خادم خود ہی ہدایتیں پائیگا۔

 ਬੀਸ ਬਿਸਵੇ ਗੁਰ ਕਾ ਮਨੁ ਮਾਨੈ ॥ 
bees bisvay gur kaa man maanai. 
The one who has convinced the Guru of his total devotion.
ਜੋ ਸਤਿਗੁਰੂ ਨੂੰ ਆਪਣੀ ਸਰਧਾ ਦਾ ਪੂਰੇ ਤੌਰ ਤੇ ਯਕੀਨ ਦਿਵਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ
بیِس بِسوے گُر کا منُ مانےَ
بیس بسوے ۔ مکمل طور پر ۔ مانے ۔سمجھے ۔
جسے مکمل طور پر سچا مرشد اپنا اگر د خادم مانے گا

 ਸੋ ਸੇਵਕੁ ਪਰਮੇਸੁਰ ਕੀ ਗਤਿ ਜਾਨੈ ॥
 so sayvak parmaysur kee gat jaanai.
that devotee gets to know the mystical state of the Transcendent God.
ਉਹ ਸੇਵਕ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੀ ਅਵਸਥਾ ਨੂੰ ਸਮਝ ਲੈਂਦਾ ਹੈ 
سۄ سیوکُ پرمیسرُ کی گتِ جانےَ
گت۔ حالت۔
۔ اس خادم کو حالات الہٰی سے آگاہی پائے گا۔ 

 ਸੋ ਸਤਿਗੁਰੁ ਜਿਸੁ ਰਿਦੈ ਹਰਿ ਨਾਉ ॥
so satgur jis ridai har naa-o.
The true Guru is the one, in whose heart is enshrined God’s Name.
ਸਤਿਗੁਰੂ (ਭੀਉਹ ਹੈ ਜਿਸ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਵੱਸਦਾ ਹੈ,
سۄ ستِگُرُ جِسُ رِدےَ ہرِ ناءُ
ردھے ۔د لمیں
سچا مرشد وہی ہے جس کے دل میں نام خدا کا بستا ہے ۔ 

 ਅਨਿਕ ਬਾਰ ਗੁਰ ਕਉ ਬਲਿ ਜਾਉ ॥
anik baar gur ka-o bal jaa-o.
I dedicate myself to that Guru many times.
(ਮੈਂ ਐਸੇਗੁਰੂ ਤੋਂ ਕਈ ਵਾਰੀ ਸਦਕੇ ਜਾਂਦਾ ਹਾਂ
انِک بار گُر کءُ بلِ جاءُ
بار بار ایسے مرشد پر قربان جاؤں جان بھی قربان ہے ۔ 

 ਸਰਬ ਨਿਧਾਨ ਜੀਅ ਕਾ ਦਾਤਾ ॥
sarab niDhaan jee-a kaa daataa.
The True Guru is the bestower of all treasures and spiritual life.
(ਸਤਿਗੁਰੂਸਾਰੇ ਖ਼ਜ਼ਾਨਿਆਂ ਦਾ ਤੇ ਆਤਮਕ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦਾ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈ,
سرب نِدھان جیء کا داتا
۔ سر ب ندھان۔ سارے خزانے ۔ جئہ ۔ جانداروں
سارے مال خزانے لوگوں کو بخشش کرتا ہے ۔ 

 ਆਠ ਪਹਰ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਰੰਗਿ ਰਾਤਾ ॥
aath pahar paarbarahm rang raataa.
At all times he remains imbued with the love of God.
ਉਹ ਅੱਠੇ ਪਹਰ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੇ ਪਿਆਰ ਵਿਚ ਰੰਗਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
آٹھ پہر پارب٘رہم رنّگِ راتا
۔ پاربرہم۔ خدا۔ رنگ راتا۔ پیار محبت میں محو ومجذوب۔
روز و شب یاد الہٰی میں مست محو ومجذوب خوشی مناتا ہے ۔ 

 ਬ੍ਰਹਮ ਮਹਿ ਜਨੁ ਜਨ ਮਹਿ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮੁ ॥
barahm meh jan jan meh paarbarahm.
The True Guru is absorbed in the Supreme God and the supreme God dwells in his His devotees.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸੇਵਕ-(ਸਤਿਗੁਰੂਪ੍ਰਭੂ ਵਿਚ ਜੁੜਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ਤੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਸੇਵਕਸਤਿਗੁਰੂ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ (ਸਦਾ ਟਿਕਿਆ ਹੈ),
ب٘رہم مہِ جنُ جن مہِ پارب٘رہمُ
برہم میہہ جن ۔ جن میہہ پار برہم۔ خدا میں خادم ا ور خادم میں خدا ۔
خادم خدا میں مجذوب ہوا رہتا ہے ۔ اور خدا خادم میں بستا ہے ۔ 

 ਏਕਹਿ ਆਪਿ ਨਹੀ ਕਛੁ ਭਰਮੁ ॥
aykeh aap nahee kachh bharam.
There is no doubt that God and the True Guru are one and the same.
ਗੁਰੂ ਤੇ ਪ੍ਰਭੂ ਇਕਰੂਪ ਹਨਇਸ ਵਿਚ ਭੁਲੇਖੇ ਵਾਲੀ ਗੱਲ ਨਹੀਂ
ایکہِ آپِ نہی کچھُ بھرمُ
ایکہہ آپ ۔ واحد ہے ۔ نہیں کچھ بھرم۔۔ اسمیں کوئی شب و شبہ نہیں۔ کیا نہ جائے ۔ پائیا نہیں جاسکتا ۔
واحد ہے ۔ اک ذات خدا کی اس میں کوئی شک نہیں 

 ਸਹਸ ਸਿਆਨਪ ਲਇਆ ਨ ਜਾਈਐ ॥
sahas si-aanap la-i-aa na jaa-ee-ai.
Even by hundreds of clever wits we cannot meet a true Guru.
ਹਜ਼ਾਰਾਂ ਚਤੁਰਾਈਆਂ ਨਾਲ ਅਜੇਹਾ ਗੁਰੂ ਮਿਲਦਾ ਨਹੀਂ, 
سہس سِیانپ لئِیا ن جائیِۓَ
لاکھوں ہو دانشمندیاں اگر پا اسے سکتے نہیں ۔ 

 ਨਾਨਕ ਐਸਾ ਗੁਰੁ ਬਡਭਾਗੀ ਪਾਈਐ ॥੩॥
naanak aisaa gur badbhaagee paa-ee-ai. ||3||
O’ Nanak, it is only through good fortune that we meet such a Guru. ||3||
ਹੇ ਨਾਨਕਵੱਡੇ ਭਾਗਾਂ ਨਾਲ ਅਜੇਹਾ ਗੁਰੂ ਮਿਲਦਾ ਹੈ 
نانک ایَسا گُرُ بڈبھاگی پائیِۓَ
گر مرشد۔ وڈبھاگی ۔ بلند قسمت۔
اے نانک ایسا مرشد بلند قسمت سے ہی ملتا ہے ۔

 ਸਫਲ ਦਰਸਨੁ ਪੇਖਤ ਪੁਨੀਤ ॥
safal darsan paykhat puneet.
Blessfull is the union with the True Guru; one gets sanctified upon accepting the Guru’s teachings.
ਗੁਰੂ ਦਾ ਦੀਦਾਰ (ਸਾਰੇਫਲ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈਦੀਦਾਰ ਕੀਤਿਆਂ ਪਵਿਤ੍ਰ ਹੋ ਜਾਈਦਾ ਹੈ,
سپھل درسنُ پیکھت پُنیِت
سپھل۔ برآور ۔ پھل دینے والا۔ درشن۔ دیدار ۔ پیکھت ۔ دیکھتے ہی ۔ پنت۔ نہایت پاک۔
کامیاب دیدار ہے ایسا دیکھتے ہی دل پاک ہوجاتا ہے ۔

 ਪਰਸਤ ਚਰਨ ਗਤਿ ਨਿਰਮਲ ਰੀਤਿ ॥
parsat charan gat nirmal reet.
Upon sincerely following the Guru’s teachings, one’s state of mind is elevated and the conduct in the journey of life becomes immaculate.
ਗੁਰੂ ਦੇ ਚਰਨ ਛੋਹਿਆਂ ਉਚੀ ਅਵਸਥਾ ਤੇ ਸੁੱਚੀ ਰਹੁਰੀਤ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ
پرست چرن گتِ نِرمل ریِتِ
پر ست ۔ چھونے سے ۔ چرن ۔ پاؤں۔ گت۔ حالت۔ نرمل۔ پاک ۔ ریت ۔ رسم و رواج ۔ اخلاق۔
پاؤں کو اس کے چھونے سے پاک اخلاق ہوجاتا ہے ۔

 ਭੇਟਤ ਸੰਗਿ ਰਾਮ ਗੁਨ ਰਵੇ ॥
bhaytat sang raam gun ravay.
Dwelling in the company of Guru, one joins in singing the praises of God,
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ ਰਿਹਾਂ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣ ਗਾ ਸਕੀਦੇ ਹਨ,
بھیٹت سنّگِ رام گُن روے
صحبت و قربت میں اس کی وصف الہٰی کہتا ہے ۔

 ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਕੀ ਦਰਗਹ ਗਵੇ ॥
paarbarahm kee dargeh gavay.
and reaches the Court of the Supreme God.
ਤੇ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੀ ਦਰਗਾਹ ਵਿਚ ਪਹੁੰਚ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ 
پارب٘رہم کی درگہ گوے
درگیہہ ۔ بارگاہ ۔ عدالت
بارگاہ خدا کا ر ہ رواں ہوجاتا ہے 

 ਸੁਨਿ ਕਰਿ ਬਚਨ ਕਰਨ ਆਘਾਨੇ ॥
sun kar bachan karan aaghaanay.
Listening to the Guru’s teachings one’s ears are satiated,
ਗੁਰੂ ਦੇ ਬਚਨ ਸੁਣ ਕੇ ਕੰਨ ਰੱਜ ਜਾਂਦੇ ਹਨ,
سُنِ کرِ بچن کرن آگھانے
دیار۔ گوے ۔ رسائی ۔ بچن۔ کلام۔ سبد۔ آگھانے ۔ سیر ہوجاتے ہیں
۔ کلام الہٰی سننے سے مرشد کام بھی صابر ہوجاتے ۔

 ਮਨਿ ਸੰਤੋਖੁ ਆਤਮ ਪਤੀਆਨੇ ॥
man santokh aatam patee-aanay.
the mind is contented, and the soul is fulfilled.
ਮਨ ਵਿਚ ਸੰਤੋਖ  ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਤੇ ਆਤਮਾ ਪਤੀਜ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
منِ سنّتۄکھُ آتم پتیِیانے
۔ سنتوکھ۔ صبر۔ آتم۔ روح۔ ذہن۔ پتیانے ۔ یقین آجاتا ہے
من صابر روح با وثوق بایقین ہوجاتی ہے 

 ਪੂਰਾ ਗੁਰੁ ਅਖ੍ਯ੍ਯਓ ਜਾ ਕਾ ਮੰਤ੍ਰ ॥
pooraa gur akh-ya-o jaa kaa mantar.
Perfect is the Guru and eternally true are His teachings.
ਸਤਿਗੁਰੂ ਪੂਰਨ ਪੁਰਖ ਹੈਉਸ ਦਾ ਉਪਦੇਸ਼ ਭੀ ਸਦਾ ਲਈ ਅਟੱਲ ਹੈ l 
پۄُرا گُرُ اکھ٘ېئۄ جا کا منّت٘ر
۔ پور گر۔ کامل مرشد۔ اکھیو ۔ لافناہ۔ منتر۔ واعظ ۔ نصیحت۔ سبق
۔ واعظ کامل مرشد کی لافنای ہے مٹتی نہیں۔ 

 ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਦ੍ਰਿਸਟਿ ਪੇਖੈ ਹੋਇ ਸੰਤ ॥
amrit darisat paykhai ho-ay sant.
Upon whom the Guru casts an ambrosial glance, that person becomes a saint.
ਸਤਿਗੁਰੂ ਜਿਸ ਵਲ ਅਮਰ ਕਰਨ ਵਾਲੀ ਨਜ਼ਰ ਨਾਲ ਤੱਕਦਾ ਹੈਓਹੀ ਸੰਤ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
انّم٘رِت د٘رِسٹِ پیکھےَ ہۄءِ سنّت
۔ انمرت درشٹ۔ آبحیات ۔ بھری نگا ہیں۔ پیکھے ۔ دیکھنے سے ۔ سنت ۔ خدا رسیدہ پاکدامن ۔ عارف
لگائیں آب حیات برساتی ہیں دیدار سے انسان عارف ہوجاتا ہے 

 ਗੁਣ ਬਿਅੰਤ ਕੀਮਤਿ ਨਹੀ ਪਾਇ ॥
gun bi-ant keemat nahee paa-ay.
Infinite are the virtues of the true Guru and no one can estimate his worth.
ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੇ ਗੁਣ ਬੇਅੰਤ ਹਨਮੁੱਲ ਨਹੀਂ ਪੈ ਸਕਦਾ 
گُݨ بِئنّت قیِمتِ نہی پاءِ
۔ بیشمار اوصاف ہیں اس میں کوئی بھی پا سکتا نہیں۔ 

 ਨਾਨਕ ਜਿਸੁ ਭਾਵੈ ਤਿਸੁ ਲਏ ਮਿਲਾਇ ॥੪॥
naanak jis bhaavai tis la-ay milaa-ay. ||4||
O’ Nanak, God unites that person with the Guru with whom He is pleased.
ਹੇ ਨਾਨਕਜੋ ਜੀਵ (ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈਉਸ ਨੂੰ ਗੁਰੂ ਨਾਲ ਮਿਲਾਉਂਦਾ ਹੈ 
نانک جِسُ بھاوےَ تِسُ لۓ مِلاءِ
۔ جس بھاوے جسے ۔ چاہتا ۔ خدا
اے نانک۔ جسے چاہتا ہے ساتھ ملاتا ہے ۔

 ਜਿਹਬਾ ਏਕ ਉਸਤਤਿ ਅਨੇਕ ॥
 jihbaa ayk ustat anayk.
 A mortal has only one tongue, but countless are the praises of God,
ਮਨੁੱਖ ਦੀਜੀਭ ਇੱਕ ਹੈਪਰ ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣ ਅਨੇਕਾਂ ਹਨ
جِہبا ایک اُستتِ انیک
استت۔ تعریف ۔ ستائش
زبان ایک ہے شمار نہیں اوصافوں کا 

 ਸਤਿ ਪੁਰਖ ਪੂਰਨ ਬਿਬੇਕ ॥
 sat purakh pooran bibayk.
who is eternal, perfect and insightful Being.

ਜੋ ਪੂਰਨ ਪੁਰਖ ਹੈਸਦਾਥਿਰ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਅਤੇ ਵਿਆਪਕ ਹੈ 
ستِ پُرکھ پۄُرن بِبیک
۔ ست پرکہہ۔ سچا۔ انسان ۔ سچی ہستی ۔ پورن ۔ کامل۔ ببیک۔ با سمجھ ۔ با عقل و شعور ۔
سچی ہستی ہے اس کی مکمل سوچ سمجھ کا مالک ہے 

 ਕਾਹੂ ਬੋਲ ਨ ਪਹੁਚਤ ਪ੍ਰਾਨੀ ॥ 
kaahoo bol na pahuchat paraanee. 
Through no words, can a mortal describe the virtues of God,
ਮਨੁੱਖ ਕਿਸੇ ਬੋਲ ਦੁਆਰਾ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣਾਂ ਤਕ ਪਹੁੰਚ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ,
کاہۄُ بۄل ن پہُچت پ٘رانی
۔ کاہو۔ کبھی ۔ بول۔ بات چیت
۔ کوئی الفاظ نہیں کلام نہیں ہیں۔ جس سے تعریف کیجائے 

 ਅਗਮ ਅਗੋਚਰ ਪ੍ਰਭ ਨਿਰਬਾਨੀ ॥
 agam agochar parabh nirbaanee.
who is inaccessible, incomprehensible, and free of all desires.

ਜੋ ਪਹੁੰਚ ਤੋਂ ਪਰੇ ਹੈਵਾਸਨਾਰਹਿਤ ਹੈਤੇ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਸਰੀਰਕ ਇੰਦ੍ਰਿਆਂ ਦੀ ਉਸ ਤਕ ਪਹੁੰਚ ਨਹੀਂ l
اگم اگۄچر پ٘ربھ نِربانی
۔ اگرچر۔ نا قابل بیا ق ۔ اگم۔ انسانی رسائی سے باہر ۔ نربانی ۔ بلا خواہش۔
۔ انسانی رسائی سے بلند بیان سے باہر بلا خواہش 

 ਨਿਰਾਹਾਰ ਨਿਰਵੈਰ ਸੁਖਦਾਈ ॥ 
niraahaar nirvair sukhdaa-ee.
He needs no sustenance, is without enmity and is peace giving,
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਨੂੰ ਕਿਸੇ ਖ਼ੁਰਾਕ ਦੀ ਲੋੜ ਨਹੀਂਪ੍ਰਭੂ ਵੈਰਰਹਿਤ ਹੈ (ਸਗੋਂ ਸਭ ਨੂੰਸੁਖ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈ
نِراہار نِرویَر سُکھدائی
نراہار۔ بلا کھانا۔ نرویر ۔ بلا دشمن۔ سکھدائی ۔ سکھ دینے والا
خدا نہ کھاتا ہے نہ پیتا ہے کسی سے دشمنی نہیں سکہدینے والا ہے 

 ਤਾ ਕੀ ਕੀਮਤਿ ਕਿਨੈ ਨ ਪਾਈ ॥
 taa kee keemat kinai na paa-ee.
no one has been able to ascertain the worth of His virtues.
ਕੋਈ ਜੀਵ ਉਸ (ਦੇ ਗੁਣਾਂਦਾ ਮੁੱਲ ਨਹੀਂ ਪਾ ਸਕਿਆ l 
تا کی قیِمتِ کِنےَ ن پائی
۔ ایسے خدا کی کوئی قدرو قیمت پا نہیں سکتا

 ਅਨਿਕ ਭਗਤ ਬੰਦਨ ਨਿਤ ਕਰਹਿ ॥ 
anik bhagat bandan nit karahi.
Countless devotees daily bow in reverence to Him,

 ਅਨੇਕਾਂ ਭਗਤ ਸਦਾ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਨਮਸਕਾਰ ਕਰਦੇ ਹਨ
انِک بھگت بنّدن نِت کرہِ
۔ انک۔ بندھن۔ بیشمارگذارشیں۔ نت ۔ ہر روز۔
۔ بیشمار عاشقان الہٰی ہر روز ا س سے گذارشیں کرتے ہیں۔ 

 ਚਰਨ ਕਮਲ ਹਿਰਦੈ ਸਿਮਰਹਿ ॥
 charan kamal hirdai simrahi.
and meditate on His Name with love and devotion.
ਅਤੇ ਉਸ ਦੇ ਕਮਲਾਂ ਵਰਗੇ ਸੋਹਣੇ ਚਰਨਾਂ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਸਿਮਰਦੇ ਹਨ
چرن کمل ہِردےَ سِمرہِ
چرن کمل۔ پاک پاوں
پاک پاوں کی میں دل سے دھیان لگاتے ہیں۔ 

 ਸਦ ਬਲਿਹਾਰੀ ਸਤਿਗੁਰ ਅਪਨੇ ॥
 sad balihaaree satgur apne.
I dedicate myself to the true Guru forever,
  ਮੈਂ ਆਪਣੇ ਉਸ ਗੁਰੂ ਤੋਂ ਸਦਾ ਸਦਕੇ ਹਾਂ,
سد بلِہاری ستِگُر اپنے
سو بار قربان ہوں اپنے سچے مرشد پر 

 ਨਾਨਕ ਜਿਸੁ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ਐਸਾ ਪ੍ਰਭੁ ਜਪਨੇ ॥੫॥
naanak jis parsaad aisaa parabh japnay. ||5||
O’ Nanak, by whose grace I can lovingly meditate on God’s Name. ||5||
ਹੇ ਨਾਨਕਜਿਸ ਗੁਰੂ ਦੀ ਮੇਹਰ ਨਾਲ ਐਸੇ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਜਪ ਸਕੀਦਾ ਹੈ l 
نانک جِسُ پ٘رسادِ ایَسا پ٘ربھُ جپنے
۔ جس پر ساد۔ جس کی رحمت سے
اے نانک جس کی رحمت سے نام خدا کا لیتے ہیں۔

 ਇਹੁ ਹਰਿ ਰਸੁ ਪਾਵੈ ਜਨੁ ਕੋਇ ॥
ih har ras paavai jan ko-ay.
Only a very rare person enjoys the essence of God’s Name,
ਕੋਈ ਵਿਰਲਾ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਸੁਆਦ ਮਾਣਦਾ ਹੈ,
اِہُ ہرِ رسُ پاوےَ جنُ کۄءِ
ہر رس۔ الہٰی لطف ۔
الہٰی عشق کا لطف کوئی ہی اٹھاتا ہے 

 ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਪੀਵੈ ਅਮਰੁ ਸੋ ਹੋਇ ॥
amrit peevai amar so ho-ay.
by partaking the Nectar of Naam, he becomes immortal.
(ਤੇ ਜੋ ਮਾਣਦਾ ਹੈਉਹ ਨਾਮਅੰਮ੍ਰਿਤ ਪੀਂਦਾ ਹੈਤੇ ਅਮਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
انّم٘رِتُ پیِوےَ امرُ سۄ ہۄءِ
امر ۔ دائمی ۔ صدیوی 
جو اٹھاتا ہے اس آب حیات کے پینے سے دائمی ہوجاتا ہے 

 ਉਸੁ ਪੁਰਖ ਕਾ ਨਾਹੀ ਕਦੇ ਬਿਨਾਸ ॥ 
us purakh kaa naahee kaday binaas.
 That person never perishes (does not endure death again and again),
ਉਸ ਇਨਸਾਨ ਦਾ ਕਦੇ ਨਾਸ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ (ਉਹ ਮੁੜ ਮੁੜ ਮੌਤ ਦਾ ਸ਼ਿਕਾਰ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ
اُسُ پُرکھ کا ناہی کدے بِناس
وناس۔ موت۔
ایسے انسان کو موت کبھی ستائی نہیں 

 ਜਾ ਕੈ ਮਨਿ ਪ੍ਰਗਟੇ ਗੁਨਤਾਸ ॥
 jaa kai man pargatay guntaas.
in whose mind manifests God, the Treasure of virtues.
ਜਿਸ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਗੁਣਾਂ ਦੇ ਖ਼ਜ਼ਾਨੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਪ੍ਰਕਾਸ਼ ਹੁੰਦਾ ਹੈ
جا کےَ منِ پ٘رگٹے گُنتاس
پر گٹے ۔ ظاہر ہوئے ۔ گن تاس۔ اوصاف کا خزانہ ۔
جس کے دل میں ( روشن ) روشنی ہواوصاف کے خزانوں کی 

 ਆਠ ਪਹਰ ਹਰਿ ਕਾ ਨਾਮੁ ਲੇਇ ॥
aath pahar har kaa naam lay-ay.
At all times such a devotee meditates on God’s Name,
ਅੱਠੇ ਪਹਿਰ ਹੀ ਉਹ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦਾ ਨਾਮ ਲੈਦਾ ਹੈ, 
آٹھ پہر ہرِ کا نامُ لےءِ
روز و شب جو دل کی گہرایوں سے نام خدا کا لیتا ہے 

 ਸਚੁ ਉਪਦੇਸੁ ਸੇਵਕ ਕਉ ਦੇਇ ॥
sach updays sayvak ka-o day-ay.
and imparts the same true advice to his disciple as well.
ਤੇ ਆਪਣੇ ਸੇਵਕ ਨੂੰ ਭੀ ਇਹੀ ਸੱਚਾ ਉਪਦੇਸ ਦੇਂਦਾ ਹੈ 
سچُ اُپدیسُ سیوک کءُ دےءِ
سچ اپدیس۔ سچا سبق ۔ سچی نصیحت ۔ ۔
۔ سچ سچا سبق و واعظ جو شاگر دو خآدم کو دیتا ہے 

 ਮੋਹ ਮਾਇਆ ਕੈ ਸੰਗਿ ਨ ਲੇਪੁ ॥
moh maa-i-aa kai sang na layp.
He is not attached to Maya (worldly desires),
ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਦੇ ਨਾਲ ਉਸ ਦਾ ਕਦੇ ਜੋੜ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ, 
مۄہ مائِیا کےَ سنّگِ ن لیپُ
موہ ۔ محبت۔ مائیا۔ دنیاوی دولت ۔ ۔ سنگ۔ ۔ ساتھ۔ لیپ ۔ پگاؤ۔ رشتہ ۔ تعلق
۔ دنیاوی دولت سے اسکا پیا رنہ ہو نہ دل للچاتا ہو ۔ 

 ਮਨ ਮਹਿ ਰਾਖੈ ਹਰਿ ਹਰਿ ਏਕੁ ॥
man meh raakhai har har ayk.
and he always enshrines God in his mind.
ਉਹ ਸਦਾ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਇਕ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਟਿਕਾਉਂਦਾ ਹੈ
من مہِ راکھےَ ہرِ ہرِ ایکُ
واحد خدا سےیار ہو اسکا دل میں اس کی یاد بھی ہو 

 ਅੰਧਕਾਰ ਦੀਪਕ ਪਰਗਾਸੇ ॥
anDhkaar deepak pargaasay.
The one whose darkness of ignorance has been replaced by the light of Naam,
ਜਿਸ ਦੇ ਅੰਦਰੋਂ ਨਾਮਰੂਪ ਦੀਵੇ ਦੇ ਨਾਲ ਅਗਿਆਨਤਾ ਦਾ ਹਨੇਰਾ ਹਟ ਕੇ ਚਾਨਣ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
انّدھکار دیِپک پرگاسے
۔ اندھکار۔ سخت اندھیرے میں۔ دیپک ۔ دیا۔ چراغ۔ پر گاس۔ روشنی کرتا ہے ۔
۔ جیسے دور ہوجاتاہے اندھیرا چراغ روشن ہو جایئے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਭਰਮ ਮੋਹ ਦੁਖ ਤਹ ਤੇ ਨਾਸੇ ॥੬॥
naanak bharam moh dukh tah tay naasay. ||6||
O Nanak, his doubt, emotional attachment and sorrows flee away.
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਦੇ ਭੁਲੇਖੇ ਤੇ ਮੋਹ ਦੇ (ਕਾਰਣ ਪੈਦਾ ਹੋਏਦੁੱਖ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨ 
نانک بھرم مۄہ دُکھ تہ تے ناسے
بھرم۔ شک۔ موہ ۔ محبت۔ دکھ۔ عذاب ۔ ناسے ۔ دور ہوتا ہے
اے نانک۔ ایسے ہی محبت ۔ شک عذاب مٹ جاتے ہیں

 ਤਪਤਿ ਮਾਹਿ ਠਾਢਿ ਵਰਤਾਈ ॥
tapat maahi thaadh vartaa-ee.
Through the Guru’s teachings, peace has prevailed even when living in the heat of vices,
ਗੁਰੂ ਦੇ ਪੂਰੇ ਉਪਦੇਸ਼ ਦੁਆਰਾ ਵਿਕਾਰਾਂ ਦੀ ਤਪਸ਼ ਵਿਚ ਵੱਸਦਿਆਂ ਭੀ, (ਪ੍ਰਭੂ ਨੇਸਾਡੇ ਅੰਦਰ ਠੰਢ ਵਰਤਾ ਦਿੱਤੀ ਹੈ,
تپتِ ماہِ ٹھاڈھِ ورتائی
تپت ۔ تپش۔ گرمی ۔ ٹھاؤ۔ ٹھنڈک۔
دل میں ہوتیں جب بدیوں کی تب بھی تھنڈک پہنچاتا ہے 

 ਅਨਦੁ ਭਇਆ ਦੁਖ ਨਾਠੇ ਭਾਈ ॥
anad bha-i-aa dukh naathay bhaa-ee.
and, O’ my brother, a state of bliss has prevailed and all woes have vanished.
ਹੇ ਭਾਈਸੁਖ ਹੀ ਸੁਖ ਹੋ ਗਿਆ ਹੈਦੁੱਖ ਨੱਸ ਗਏ ਹਨ l 
اندُ بھئِیا دُکھ ناٹھے بھائی
انند۔ سکون۔
سکون ہوا عذاب مٹے سارا دکھ درد کا فور ہوا۔ 

 ਜਨਮ ਮਰਨ ਕੇ ਮਿਟੇ ਅੰਦੇਸੇ ॥
 janam maran kay mitay andaysay.
 The fear of birth and death is dispelled,

 ਜਨਮ ਮਰਨ ਦੇ ਗੇੜ ਵਿਚ ਪੈਣ ਦੇ ਡਰ ਫ਼ਿਕਰ ਮਿਟ ਗਏ ਹਨ, 
جنم مرن کے مِٹے انّدیسے
اندیسے ۔ خوف۔
۔ موت کا خوف تب دل میں کیوں رہتاہے ۔ 

 ਸਾਧੂ ਕੇ ਪੂਰਨ ਉਪਦੇਸੇ ॥
saaDhoo kay pooran updaysay.
through the perfect teachings of the Guru.
 ਇਹ ਗੁਰੂ ਦੀ ਪੂਰੀ ਸਿਖਮਤ ਦਾ ਸਦਕਾ ਹੀ ਹੋਇਆ ਹੈ l 
سادھۄُ کے پۄُرن اُپدیسے
پورن۔ اپدیسے ۔ مکمل ۔ سبق ۔ واعظ یا نصیحت۔
عارف پاکدامن کے کامل سبق واعظ جو کہتا ہے ۔ 

 ਭਉ ਚੂਕਾ ਨਿਰਭਉ ਹੋਇ ਬਸੇ ॥
bha-o chookaa nirbha-o ho-ay basay.
All fear is lifted, and now we dwell in fearlessness,
(ਸਾਰਾਡਰ ਮੁੱਕ ਗਿਆ ਹੈਹੁਣ ਨਿਡਰ ਵੱਸਦੇ ਹਾਂ,
بھءُ چۄُکا نِربھءُ ہۄءِ بسے
بھو۔ خوف۔ چوکا ۔ ختم ہوا۔ نر بھو۔ بیخوف۔
خوف مٹا بیخوف ہوئے دل کے شکل مٹ گئے

 ਸਗਲ ਬਿਆਧਿ ਮਨ ਤੇ ਖੈ ਨਸੇ ॥
sagal bi-aaDh man tay khai nasay.
and all the maladies are destroyed and dispelled from the mind.
ਸਾਰੇ ਰੋਗ ਨਾਸ ਹੋ ਕੇ ਮਨੋਂ ਵਿਸਰ ਗਏ ਹਨ 
سگل بِیادھِ من تے کھےَ نسے
بیادھ ۔ بیماریاں۔ کھے ۔ مٹے ۔
تمام مٹیں بیماریاں دل کی بے فکر ہوئے ۔ 

 ਜਿਸ ਕਾ ਸਾ ਤਿਨਿ ਕਿਰਪਾ ਧਾਰੀ ॥
jis kaa saa tin kirpaa Dhaaree.
The Guru to whom we surrendered has shown mercy;
ਜਿਸ ਗੁਰੂ ਦੇ ਬਣੇ ਸਾਂਉਸ ਨੇ (ਸਾਡੇ ਉਤੇਕਿਰਪਾ ਕੀਤੀ ਹੈ
جِس کا سا تِنِ کِرپا دھاری
کر پادھاری ۔ مہربانی فرمائی ۔
جس کی تھے ملکیت میں اس نے رحمت فمرائی ہے ۔ 

 ਸਾਧਸੰਗਿ ਜਪਿ ਨਾਮੁ ਮੁਰਾਰੀ ॥
saaDhsang jap naam muraaree.
by meditating on God’s Name in the holy congregation,
ਸਤਸੰਗ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਜਪ ਕੇ, 
سادھسنّگِ جپِ نامُ مُراری
سادھ۔ وہ انسان جس نے مکمل طور پر اندرونی و بیرونی ذہنی و جسمانی پاکیزگی حاسل کرلی ہے ۔ سنگ۔ صحبت و قربت ۔ مراری ۔ خدا۔
صحبت و قربت میں عارف کی خدا کا نام لیا 

 ਥਿਤਿ ਪਾਈ ਚੂਕੇ ਭ੍ਰਮ ਗਵਨ ॥ 
thit paa-ee chookay bharam gavan. 
we have attained Spiritual stability and our doubts and wanderings have ended.
ਅਸਾਂ ਸ਼ਾਂਤੀ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲਈ ਹੈ ਤੇ ਸਾਡੇ ਭੁਲੇਖੇ ਤੇ ਭਟਕਣਾ ਮੁੱਕ ਗਏ ਹਨ l 
تھِتِ پائی چۄُکے بھ٘رم گون
تھت۔ سکون۔ بھرم۔ شکوک ۔ گون۔ تناسخ۔
سکون ملا مٹے وہم گمان تناسخ گیا۔

 ਸੁਨਿ ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਹਰਿ ਜਸੁ ਸ੍ਰਵਨ ॥੭॥
 sun naanak har har jas sarvan. ||7||
O’ Nanak, this has happened by listening to God’s praises with our ears.
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਜਸ ਕੰਨੀਂ ਸੁਣ ਕੇ (ਇਹ ਭਰਮੳ ਅਤੇ ਭਟਕਣਾ ਮੁੱਕੀ ਹੈ
سُنِ نانک ہرِ ہرِ جسُ س٘رون
ہر جس ۔ الہٰی حمدودعا۔
اے نانک ۔ تعریف خدا کی کانوں سے سنکر 

 ਨਿਰਗੁਨੁ ਆਪਿ ਸਰਗੁਨੁ ਭੀ ਓਹੀ ॥
nirgun aap sargun bhee ohee.
He Himself is intangible (unaffected by Maya); and He Himself is tangible (in the form of His Creation).
ਉਹ ਆਪ ਮਾਇਆ ਦੇ ਤਿੰਨਾਂ ਗੁਣਾਂ ਤੋਂ ਵੱਖਰਾ ਹੈਤ੍ਰਿਗੁਣੀ ਸੰਸਾਰ ਦਾ ਰੂਪ ਭੀ ਆਪ ਹੀ ਹੈ,
نِرگُنُ آپِ سرگُنُ بھی اۄہی
نرگن۔ بلا اوصاف ۔ سرگن۔ سارے اوصاف دنیاوی دولت کے اوساف سے پاک ہوتے ہوئے ۔ سب وصفؤں والا ہے ۔ ۔ ۔ 
سب وصفوں کا مالک پاک خدا بلا وصف دنیاوی ہے ۔ 

 ਕਲਾ ਧਾਰਿ ਜਿਨਿ ਸਗਲੀ ਮੋਹੀ ॥
kalaa Dhaar jin saglee mohee.
He has fascinated the entire universe by manifesting His power.
ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪਣੀ ਤਾਕਤ ਕਾਇਮ ਕਰ ਕੇ ਸਾਰੇ ਜਗਤ ਨੂੰ ਮੋਹਿਆ ਹੈ
کلا دھارِ جِنِ سگلی مۄہی
۔ کلا دھار۔ اپنی قوت پیدا کرکے ۔ سگلی ۔ ساری ۔ موہی ۔ محبت کی گرفت میں لائی
اس کی قدرت اور طاقت نے سب کو حیرت میں ڈالا ہے اور گرفتار ہیں سب محبت اپنے کھیل 

 ਅਪਨੇ ਚਰਿਤ ਪ੍ਰਭਿ ਆਪਿ ਬਨਾਏ ॥
apnay charit parabh aap banaa-ay.
He Himself has created His wonders.
ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪਣੇ ਖੇਲਤਮਾਸ਼ੇ ਆਪ ਹੀ ਬਣਾਏ ਹਨ,
اپنے چرِت پ٘ربھِ آپِ بناۓ
چرت۔ کھیل
سب آپ بنائے خدا نے 

 ਅਪੁਨੀ ਕੀਮਤਿ ਆਪੇ ਪਾਏ ॥
apunee keemat aapay paa-ay.
He Himself ascertains His worth.
ਆਪਣੀ ਬਜ਼ੁਰਗੀ ਦਾ ਮੁੱਲ ਭੀ ਆਪ ਹੀ ਪਾਂਦਾ ਹੈ
اپُنی قیِمتِ آپے پاۓ
اور خود اپنی عظمت کی قدر وقیمت پاتا ہے ۔ 

 ਹਰਿ ਬਿਨੁ ਦੂਜਾ ਨਾਹੀ ਕੋਇ ॥
har bin doojaa naahee ko-ay.
Besides God there is no one else like Him.
ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਬਿਨਾ (ਉਸ ਵਰਗਾਹੋਰ ਕੋਈ ਨਹੀਂ ਹੈ, 
ہرِ بِنُ دۄُجا ناہی کۄءِ
نہیں ثانی کوئی خدا کا واحد ہے لاثانی ہے 

 ਸਰਬ ਨਿਰੰਤਰਿ ਏਕੋ ਸੋਇ ॥
sarab nirantar ayko so-ay.
He is the only One, permeating all.
ਸਭ ਦੇ ਅੰਦਰ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਮੌਜੂਦ ਹੈ
سرب نِرنّترِ ایکۄ سۄءِ
سرب نرئتر۔ سب کے ذہن میں۔
۔ نور اسی کا سب کے اندر گو واحد وہ ہے ۔ 

 ਓਤਿ ਪੋਤਿ ਰਵਿਆ ਰੂਪ ਰੰਗ ॥
ot pot ravi-aa roop rang.
Through and through, He pervades in all forms and colors.
ਤਾਣੇ ਪੇਟੇ ਵਾਂਗ ਸਾਰੇ ਰੂਪਾਂ ਤੇ ਰੰਗਾਂ ਵਿਚ ਵਿਆਪਕ ਹੈ;
اۄتِ پۄتِ روِیا رۄُپ رنّگ
اوت پوت۔ تانے اور پیٹے کی مانند۔
شکلیں سب میں اسی نے رنگ بھرا ہے ۔ تانے اور پیٹے کی مانند سارے عالم میں بستا ہے ۔

 ਭਏ ਪ੍ਰਗਾਸ ਸਾਧ ਕੈ ਸੰਗ ॥
bha-ay pargaas saaDh kai sang.
This enlightenment is revealed in the company of the Guru.
ਇਹ ਚਾਨਣ (ਭਾਵਸਮਝਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ ਪ੍ਰਕਾਸ਼ਦਾ ਹੈ
بھۓ پ٘رگاس سادھ کےَ سنّگ
پر گاس۔ روشن ۔ ظہور۔
صحبت و قبربت عارف پاکدامن کی نور اسکا ظہور میں آتا ہے ۔