Urdu-Page-279

` ਤ੍ਰਿਪਤਿ ਨ ਆਵੈ ਮਾਇਆ ਪਾਛੈ ਪਾਵੈ ॥
taripat na aavai maa-i-aa paachhai paavai.
He keeps on amassing wealth, but is never satiated.
ਮਾਇਆ ਜਮ੍ਹਾ ਕਰੀ ਜਾਂਦਾ ਹੈ, (ਪਰਰੱਜਦਾ ਨਹੀਂ
ت٘رِپتِ ن آوےَ مائِیا پاچھےَ پاوےَ
 ترپت ۔ پیاس نہیں بجھتی ۔ خواہش پوری نہیں ہوتی ۔ پاچھے پاوے ۔ جمع کرتا ہے
پیاس نہیں بجھتی خواہش پوری نہیں ہوتی دولت کے پیچھے بھاگتا ہے اور جمع کرتا ہے ۔ 

 ਅਨਿਕ ਭੋਗ ਬਿਖਿਆ ਕੇ ਕਰੈ ॥
anik bhog bikhi-aa kay karai.
He enjoys many pleasures of Maya,
ਮਾਇਆ ਦੀਆਂ ਅਨੇਕਾਂ ਮੌਜਾਂ ਮਾਣਦਾ ਹੈ,
انِک بھۄگ بِکھِیا کے کرےَ
 وکھیا۔ زہر۔ دنیاوی دولت
بغیر صبر کسی کی خواہش پوری نہیں ہوتی ۔ 

 ਨਹ ਤ੍ਰਿਪਤਾਵੈ ਖਪਿ ਖਪਿ ਮਰੈ ॥
nah tariptaavai khap khap marai.
but does not feel satisfied and becomes miserable.
ਤਸੱਲੀ ਨਹੀਂ ਸੁ ਹੁੰਦੀ, (ਭੋਗਾਂ ਦੇ ਮਗਰ ਹੋਰ ਭੱਜਦਾ ਹੈ ਤੇਬੜਾ ਦੁੱਖੀ ਹੁੰਦਾ ਹੈ
نہ ت٘رِپتاوےَ کھپِ کھپِ مرےَ
کھپ کھپ ۔ سخت محنت کرتا ہے ۔ عذاب اُٹھاتا ہے
جیسے خواب میں سارے کام بیکار ہوتے ہیں ۔ 

 ਬਿਨਾ ਸੰਤੋਖ ਨਹੀ ਕੋਊ ਰਾਜੈ ॥
binaa santokh nahee ko-oo raajai.
Without contentment, no one is satisfied.
ਸੰਤੁਸ਼ਟਤਾ ਦੇ ਬਾਝੋਂ ਕਿਸੇ ਨੂੰ ਰੱਜ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦਾ
بِنا سنّتۄکھ نہی کۄئۄُ راجےَ
سنتوکھ ۔ صبر
قناعت(صبر) کے بغیر ، کوئی مطمئن نہیں ہوتا ہے۔

 ਸੁਪਨ ਮਨੋਰਥ ਬ੍ਰਿਥੇ ਸਭ ਕਾਜੈ ॥
supan manorath barithay sabh kaajai.
All efforts of an unsatisfied person are in vain, like the illusions of a dream.
ਸੁਪਨੇ ਦੇ ਪਰਯੋਜਨਾ ਦੀ ਤਰ੍ਹਾਂ ਸੰਤੋਖਹੀਣ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਸਾਰੇ ਕੰਮ ਬੇਫਾਇਦਾ ਹਨ
سُپن منۄرتھ ب٘رِتھے سبھ کاجےَ
سپن۔ خواب ۔ منورتھ ۔ مطلب۔ مقصد۔ مانند۔ برتھے ۔ بیکار۔ بیفائدہ ۔ کاجے ۔ کام
کسی عدم اطمینان شخص کی ساری کاوشیں بیکار ہیں ، جیسے خواب کے بھرموں کی طرح۔

 ਨਾਮ ਰੰਗਿ ਸਰਬ ਸੁਖੁ ਹੋਇ ॥
naam rang sarab sukh ho-ay.
There is complete peace in the love of Naam.
ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਦੀ ਮੌਜ ਵਿਚ (ਹੀਸਾਰਾ ਸੁਖ ਹੈ l
نام رنّگِ سرب سُکھُ ہۄءِ 
 نام ۔ سچ ۔ رنگ۔ پریم پیار۔ سرب سکھ ۔ سارے آرام ۔
الہٰی نام یا سچ کے پیار اور پریم سے سارے سکھ ملتے ہیں

 ਬਡਭਾਗੀ ਕਿਸੈ ਪਰਾਪਤਿ ਹੋਇ ॥
badbhaagee kisai paraapat ho-ay.
Only a fortunate one is blessed with this (bliss).
ਕਿਸੇ ਵੱਡੇ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲੇ ਨੂੰ ਇਹ ਸੁਖ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
بڈبھاگی کِسےَ پراپتِ ہۄءِ
وڈبھاگی ۔ بلند قسمت
صرف ایک خوش قسمت شخص اس (نعمت) سے نوازاجاتا ہے۔

 ਕਰਨ ਕਰਾਵਨ ਆਪੇ ਆਪਿ ॥
karan karaavan aapay aap.
God Himself is doer and Cause of all causes.
(ਜੋਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਸਭ ਕੁਝ ਕਰਨ ਦੇ ਤੇ (ਜੀਵਾਂ ਪਾਸੋਂਕਰਾਉਣ ਦੇ ਸਮਰੱਥ ਹੈ l 
کرن کراون آپے آپِ
کرن کراؤن ۔ کرنے اور کرانے والا۔
سب کچھ کرنے کروانے والا ہے خود خدا۔ 

 ਸਦਾ ਸਦਾ ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਜਾਪਿ ॥੫॥
sadaa sadaa naanak har jaap. ||5||
O’ Nanak, remember Him with loving devotion forever and ever.||5||
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਦਾ ਸਿਮਰ l 
سدا سدا نانک ہرِ جاپِ
ہر جاپ ۔ خدا کو یاد کر
اے نانک ہمیشہ اسے یاد کر ۔

 ਕਰਨ ਕਰਾਵਨ ਕਰਨੈਹਾਰੁ ॥
karan karaavan karnaihaar.
It is God who does everything and causes everything to be done.
ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਸਭ ਕੁਝ ਕਰਨ ਜੋਗਾ ਹੈ ਤੇ (ਜੀਵਾਂ ਪਾਸੋਂਕਰਾਉਣ ਜੋਗਾ ਹੈ
کرن کراون کرنیَہارُ
کرنیہار۔ کرنے کے لائق
ہر کام کو کرنے اور کرانے والا ہے آپ 

 ਇਸ ਕੈ ਹਾਥਿ ਕਹਾ ਬੀਚਾਰੁ ॥
is kai haath kahaa beechaar.
Reflect upon this fact; that there is nothing under the control of the mortal.
ਵਿਚਾਰ ਕੇ ਵੇਖ ਲੈਇਸ ਜੀਵ ਦੇ ਹੱਥ ਕੁਝ ਭੀ ਨਹੀਂ ਹੈ 
اِس کےَ ہاتھِ کہا بیِچارُ
کہا۔ کہاں۔ ویچار۔ سمجھ
کرتار انسان میں کہاں ہے توفیق دیکھو گر ویچار ۔ 

 ਜੈਸੀ ਦ੍ਰਿਸਟਿ ਕਰੇ ਤੈਸਾ ਹੋਇ ॥
jaisee darisat karay taisaa ho-ay.
As is the grace of God on the mortal, so he becomes.
ਪ੍ਰਭੂ ਜਿਹੋ ਜਿਹੀ ਨਜ਼ਰ (ਬੰਦੇ ਵਲਕਰਦਾ ਹੈ (ਬੰਦਾਉਹੋ ਜਿਹਾ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
جیَسی د٘رِسٹِ کرے تیَسا ہۄءِ
درشٹ ۔ نظریہ۔ تیسا۔ ویسا
جیسی ہے نظر عنایت خدا کی ویسا انسان ہوجاتا ہے ۔ 

 ਆਪੇ ਆਪਿ ਆਪਿ ਪ੍ਰਭੁ ਸੋਇ ॥
aapay aap aap parabh so-ay.
God is all by Himself.
ਉਹ ਮਾਲਕ ਸਾਰਾ ਕੁਝ ਖੁਦ ਹੀ ਹੈ
آپے آپِ آپِ پ٘ربھُ سۄءِ
خود ہی وہ خدا ہے ۔

 ਜੋ ਕਿਛੁ ਕੀਨੋ ਸੁ ਅਪਨੈ ਰੰਗਿ ॥
jo kichh keeno so apnai rang.
Whatever He has created, is out of His own pleasure.
ਜੋ ਕੁਝ ਉਸ ਬਣਾਇਆ ਹੈ ਆਪਣੀ ਮੌਜ ਵਿਚ ਬਣਾਇਆ ਹੈ;
جۄ کِچھُ کیِنۄ سُ اپنےَ رنّگِ
اپنے رنگ۔ اپنی منشاکے مطابق
جو کچھ ہے وہ اپنی موج و منشا سے ہے کرتا۔ 

 ਸਭ ਤੇ ਦੂਰਿ ਸਭਹੂ ਕੈ ਸੰਗਿ ॥
sabh tay door sabhhoo kai sang.
He is within His creation, yet unaffected by it.
ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਦੇ ਅੰਗਸੰਗ ਭੀ ਹੈ ਤੇ ਸਭ ਤੋਂ ਵੱਖਰਾ ਭੀ ਹੈ
سبھ تے دۄُرِ سبھہۄُ کےَ سنّگِ
سنگ۔ ساتھ
سب سے دور وہ سب کے حضور وہ 

 ਬੂਝੈ ਦੇਖੈ ਕਰੈ ਬਿਬੇਕ ॥
boojhai daykhai karai bibayk.
He understands, beholds and passes judgment on our deeds.
ਪ੍ਰਭੂ ਸਭ ਕੁਝ ਸਮਝਦਾ ਹੈਵੇਖਦਾ ਹੈ ਤੇ ਨਿਰਣਯ ਕਰਦਾ ਹੈ,
بۄُجھےَ دیکھےَ کرےَ بِبیک
بوجہے ۔ سمجھے ۔ بیبک ۔ وچار کرتا ہے ۔ خیال دوڑاتا ہے ۔ پہچان کرتا ہے
سمجھتا ہے نظر کرتا ہے تحقیق خود ہی کرتا ہے ۔

 ਆਪਹਿ ਏਕ ਆਪਹਿ ਅਨੇਕ ॥
aapeh ayk aapeh anayk.
He Himself is the One, and He Himself is in many forms.
ਉਹ ਆਪ ਹੀ ਇੱਕ ਹੈ ਤੇ ਆਪ ਹੀ ਅਨੇਕ (ਰੂਪਧਾਰ ਰਿਹਾ ਹੈ
آپہِ ایک آپہِ انیک
 آپیہہ ایک۔ خود ہی واحد۔ آپیہہ انیک۔ بیشمار ۔ نہ پیدا ہوتا ہے نہ فناہ ہوتا ہے
وحدت میں ذات ہے ۔ اس کی کثرت میں بھی آپ ہی ہے 

 ਮਰੈ ਨ ਬਿਨਸੈ ਆਵੈ ਨ ਜਾਇ ॥
marai na binsai aavai na jaa-ay.
He does not die or perish; He is free of birth and death.
ਉਹ ਨਾਹ ਕਦੇ ਮਰਦਾ ਹੈ  ਬਿਨਸਦਾ ਹੈਨਾਹ ਜੰਮਦਾ ਹੈ  ਮਰਦਾ ਹੈ;
مرےَ ن بِنسےَ آوےَ ن جاءِ
 موت نہ اسے مٹاتی ہے نہ ہوتا ہے پیدا ۔ 

 ਨਾਨਕ ਸਦ ਹੀ ਰਹਿਆ ਸਮਾਇ ॥੬॥
naanak sad hee rahi-aa samaa-ay. ||6||
O’ Nanak, He remains forever all-pervading. ||6||
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਸਦਾ ਹੀ ਸਾਰਿਆਂ ਅੰਦਰ ਰਮਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
نانک سد ہی رہِیا سماءِ
سدہی ۔ ہمیشہ ۔ رہیا سمائے ۔ اپنے اندر بستا ہے ۔
اے نانک اس کی ذات ہے ایک سی سب میں نور اسی کا ہے ۔ 

 ਆਪਿ ਉਪਦੇਸੈ ਸਮਝੈ ਆਪਿ ॥
aap updaysai samjhai aap.
He Himself instructs, and He Himself learns,
ਆਪ ਹੀ ਸਿੱਖਿਆ ਦੇਂਦਾ ਹੈ ਤੇ ਆਪ ਹੀ (ਉਸ ਸਿੱਖਿਆ ਨੂੰਸਮਝਦਾ ਹੈ,
آپِ اُپدیسےَ سمجھےَ آپِ
خدا خود ہی کرتا ہے ۔ واعظ خود ہی اسے سمجھتا ہے ۔ 

 ਆਪੇ ਰਚਿਆ ਸਭ ਕੈ ਸਾਥਿ ॥
aapay rachi-aa sabh kai saath.
because He Himself is blended with all.
ਕਿਉਂਕਿ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਦੇ ਨਾਲ ਮਿਲਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ
آپے رچِیا سبھ کےَ ساتھِ
رچیا۔ بسیا۔ ملیا
سب عالم کو پیدا کرکے سب میں وہ خود بستا ہے 

 ਆਪਿ ਕੀਨੋ ਆਪਨ ਬਿਸਥਾਰੁ ॥
aap keeno aapan bisthaar.
He Himself has created His own expanse (the universe).
ਆਪਣਾ ਖਿਲਾਰਾ ਉਸ ਨੇ ਆਪ ਹੀ ਬਣਾਇਆ ਹੈ,
آپِ کیِنۄ آپن بِستھارُ
بستھار۔ پھیلاؤ 
اپنے سے خود آپ بنا کر اپنا آپ پھیلایا ہے ۔

 ਸਭੁ ਕਛੁ ਉਸ ਕਾ ਓਹੁ ਕਰਨੈਹਾਰੁ ॥
sabh kachh us kaa oh karnaihaar.
Everything belongs to Him, He is the creator.
ਹਰ ਵਸਤੂ ਉਸ ਦੀ ਹੈਉਹ ਸਿਰਜਣਹਾਰ ਹੈ
سبھُ کچھُ اُس کا اۄہُ کرنیَہارُ
کر نیہار۔ کرنے کے لائق۔ کار ساز۔ کرتار
ہر شے کا وہ ہے قادر اسی نے عالم بنایا ہے ۔

 ਉਸ ਤੇ ਭਿੰਨ ਕਹਹੁ ਕਿਛੁ ਹੋਇ ॥
us tay bhinn kahhu kichh ho-ay.
Tell me, can anything happen without His Will?
ਦੱਸੋਉਸ ਤੋਂ ਵੱਖਰਾ ਕੁਝ ਹੋ ਸਕਦਾ ਹੈ?
اُس تے بھِنّن کہہُ کِچھُ ہۄءِ
بھن۔ علیحدہ
کہو اگر اس سے باہر کسی نے کچھ کیا ہے اور ہوا ہے

 ਥਾਨ ਥਨੰਤਰਿ ਏਕੈ ਸੋਇ ॥
thaan thanantar aikai so-ay.
In the spaces and interspaces, He is the One, pervading everywhere.
ਹਰ ਥਾਂ (ਥਾਵਾਂ ਅਤੇ ਉਨ੍ਹਾਂ ਦੀਆਂ ਵਿੱਥਾਂ ਵਿੱਚਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ (ਮੌਜੂਦਹੈ
تھان تھننّترِ ایکےَ سۄءِ
تھان تھننتر ۔ ہر جا۔ ایکو سوئے ۔ وہی واحد ہے
ہر جا اسی کا نور ظہور ہوا ہے ۔

 ਅਪੁਨੇ ਚਲਿਤ ਆਪਿ ਕਰਣੈਹਾਰ ॥
apunay chalit aap karnaihaar.
In His own play, He Himself is the Player.
ਆਪਣਿਆਂ ਰੂਪਕਾਂ (ਤਮਾਸ਼ੇਖੇਡਾਂ) ਦਾ ਉਹ ਆਪੇ ਹੀ ਕਲਾਕਾਰ ਹੈ
اپُنے چلِت آپِ کرݨیَہار
چلت ۔ کار۔ وہار۔ کار کردگی
اپنا کھیل آپ ہی کرنے لائق ہے 

 ਕਉਤਕ ਕਰੈ ਰੰਗ ਆਪਾਰ ॥
ka-utak karai rang aapaar.
He conducts His Plays with infinite variety.
ਉਹ ਬੇਅੰਤ ਰੰਗਾਂ ਦੇ ਤਮਾਸ਼ੇ ਕਰਦਾ ਹੈ 
کئُتک کرےَ رنّگ آپار
 کوتک ۔ ککھی۔ تماشے ۔ رنگ۔ پریم ۔ پیار۔ اپار۔ لا محدود
وہ اپنے کھیلوں کو لامحدود قسم کے ساتھ چلاتا ہے۔ 

 ਮਨ ਮਹਿ ਆਪਿ ਮਨ ਅਪੁਨੇ ਮਾਹਿ ॥
man meh aap man apunay maahi.
He Himself is in the minds of all, and all are in His mind.
ਉਹ ਜੀਵਾਂ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਆਪ ਵੱਸ ਰਿਹਾ ਹੈਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਟਿਕਾਈ ਬੈਠਾ ਹੈ;
من مہِ آپِ من اپُنے ماہِ
ہر دل میں وہ خود بستا ہے اور اس کے من میں سب کا تصور ہے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਕੀਮਤਿ ਕਹਨੁ ਨ ਜਾਇ ॥੭॥
naanak keemat kahan na jaa-ay. ||7||
O’ Nanak, His worth cannot be estimated. ||7||
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਦਾ ਮੁੱਲ ਦੱਸਿਆ ਨਹੀਂ ਜਾ ਸਕਦਾ
نانک قیِمتِ کہنُ ن جاءِ
قیمت ۔ مول
اے نانک۔ بے مول ہے ذات اس کی تو قیمت کون بتائے اس کی ۔ 

 ਸਤਿ ਸਤਿ ਸਤਿ ਪ੍ਰਭੁ ਸੁਆਮੀ ॥
sat sat sat parabh su-aamee.
 God, the Supreme Master of all is forever true, eternal, and everlasting.
(ਸਭ ਦਾਮਾਲਕ ਪ੍ਰਭੂ ਸਦਾ ਹੀ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਹੈ l
ستِ ستِ ستِ پ٘ربھُ سُیامی
ست۔ سچ۔ دائمی سچ ۔ پربھ۔ خدا۔
خدا دائمی سچا اور پاک آقا ہے ۔ 

 ਗੁਰ ਪਰਸਾਦਿ ਕਿਨੈ ਵਖਿਆਨੀ ॥
gur parsaad kinai vakhi-aanee.
It is only a rare person, who by the Guru’s grace has described this fact.
ਗੁਰੂ ਦੀ ਮੇਹਰ ਨਾਲ ਕਿਸੇ ਵਿਰਲੇ ਨੇ ਇਹ ਗੱਲ ਦੱਸੀ ਹੈ 
گُر پرسادِ کِنےَ وکھِیانی
گرپر ساد۔ رحمت مرشد سے ۔ کنے ۔ کسی نے ۔و کھیانی ۔ بتایا ہے ۔ تشریح کی ہے ۔
مگر رحمت مرشد سے کسی نے ہی اسے بتایا ہے ۔ ۔ 

 ਸਚੁ ਸਚੁ ਸਚੁ ਸਭੁ ਕੀਨਾ ॥
 sach sach sach sabh keenaa.
 God is Eternal and His creation is also complete and perfect.
ਜੋ ਕੁਝ ਉਸ ਨੇ ਬਣਾਇਆ ਹੈ ਉਹ ਭੀ ਮੁਕੰਮਲ ਹੈ (ਭਾਵਅਧੂਰਾ ਨਹੀਂ)
سچُ سچُ سچُ سبھُ کیِنا
کنا۔ کرتا ہے
جو کچھ اس نے کیا ہے وہ سچا پاک دائمی اور مکمل ہے ۔ 

 ਕੋਟਿ ਮਧੇ ਕਿਨੈ ਬਿਰਲੈ ਚੀਨਾ ॥
kot maDhay kinai birlai cheenaa.
It is a rare one out of millions who has recognized this fact.
ਇਹ ਗੱਲ ਕ੍ਰੋੜਾਂ ਵਿਚੋਂ ਕਿਸੇ ਵਿਰਲੇ ਨੇ ਪਛਾਣੀ ਹੈ,
کۄٹِ مدھے کِنےَ بِرلےَ چیِنا
۔ کوٹ مدھے ۔ کروڑوں میں سے ۔ چینا۔ پہچان کی ہے
کروڑوں میں سے ایک نے ہی اسے پہچانا ہے 

 ਭਲਾ ਭਲਾ ਭਲਾ ਤੇਰਾ ਰੂਪ ॥
bhalaa bhalaa bhalaa tayraa roop.
 O’ God, Beautiful, very beautiful is your tangible form.
ਹੇ ਸੁਆਮੀਤੇਰਾ ਰੂਪ ਕਿਆ ਪਿਆਰਾ ਪਿਆਰਾ ਹੈ l 
بھلا بھلا بھلا تیرا رۄُپ
۔ روپ ۔ شکل ۔
۔ پیاری پیاری نیک نیک شکل ہے تیری ۔ 

 ਅਤਿ ਸੁੰਦਰ ਅਪਾਰ ਅਨੂਪ ॥
at sundar apaar anoop.
You are extremely Beautiful, Infinite and Incomparable.
ਤੂੰ ਪਰਮ ਖੂਬਸੂਰਤਬੇਹੱਦ ਅਤੇ ਬੇਮਿਸਾਲ ਹੈ 
اتِ سُنّدر اپار انۄُپ
انوپ ۔ نرالی ۔ انوکھی ۔
بے شمار خوبصورت ے مثال لاثانی اور نورانی ہے 

 ਨਿਰਮਲ ਨਿਰਮਲ ਨਿਰਮਲ ਤੇਰੀ ਬਾਣੀ ॥
nirmal nirmal nirmal tayree banee.
Pure and sweet is Your divine word,

ਪਵਿੱਤ੍ਰ ਤੇ ਮਿੱਠੀ ਹੈ ਤੇਰੀ ਬਾਣੀ
نِرمل نِرمل نِرمل تیری باݨی
نرمل ۔ پاک ۔ بانی ۔ بول۔
پاک نہایت پاک ہے کلام تیرا 

 ਘਟਿ ਘਟਿ ਸੁਨੀ ਸ੍ਰਵਨ ਬਖ੍ਯ੍ਯਾਣੀ ॥
ghat ghat sunee sarvan bakh-yaanee.
Which is heard in each and every heart through the ears, and uttered through the tongue.
ਹਰੇਕ ਸਰੀਰ ਵਿਚ ਕੰਨਾਂ ਦੀ ਰਾਹੀਂ ਸੁਣੀ ਜਾ ਰਹੀ ਹੈਤੇ ਜੀਭ ਨਾਲ ਉੱਚਾਰੀ ਜਾ ਰਹੀ ਹੈ 
گھٹِ گھٹِ سُنی س٘رون بکھ٘ېاݨی
گھٹ گھٹ ۔ ہر دل نے ۔ سرون سنی ۔ کانوں سے سنی ۔ وکھانی ۔ بتائی ۔
ہر دل میں سن سن کر ۔ ہر کان سنانی ہے ۔ 

 ਪਵਿਤ੍ਰ ਪਵਿਤ੍ਰ ਪਵਿਤ੍ਰ ਪੁਨੀਤ ॥
 pavitar pavitar pavitar puneet.
 He becomes sublimely pure and holy,
ਉਹ ਪਵਿਤ੍ਰ ਹੀ ਪਵਿਤ੍ਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
پوِت٘ر پوِت٘ر پوِت٘ر پُنیِت
پنیت۔ نہایت پاک ۔۔ پوتر۔ پاک۔
اے نانک دل کی گہرائیوں اور پریم سے جو یاد کریگا رب کو پاک نہایت پاک ہوجائیگا

 ਨਾਮੁ ਜਪੈ ਨਾਨਕ ਮਨਿ ਪ੍ਰੀਤਿ ॥੮॥੧੨॥
naam japai naanak man pareet. ||8||12||
O’ Nanak, the one who lovingly meditates on God’s name. ||8||12||
 ਹੇ ਨਾਨਕਜੋ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਪ੍ਰੀਤ ਨਾਲ ਮਨ ਵਿਚ ਜਪਦਾ ਹੈਉਹ ਪਵਿਤ੍ਰ ਹੀ ਪਵਿਤ੍ਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
نامُ جپےَ نانک منِ پ٘ریِتِ
من پریت ۔ دلی ۔ پیار سے 

 ਸਲੋਕੁ ॥
salok.
Shalok:
سلۄکُ
 ਸੰਤ ਸਰਨਿ ਜੋ ਜਨੁ ਪਰੈ ਸੋ ਜਨੁ ਉਧਰਨਹਾਰ ॥
sant saran jo jan parai so jan uDhranhaar.
The one who seeks the shelter of the Saints is saved from the bonds of Maya.
ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਸੰਤਾਂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਂਦਾ ਹੈਉਹ ਮਾਇਆ ਦੇ ਬੰਧਨਾਂ ਤੋਂ ਬਚ ਜਾਂਦਾ ਹੈ;.
سنّت سرنِ جۄ جنُ پرےَ سۄ جنُ اُدھرنہار
سرن۔ پناہ ۔ جن۔ انسان ۔ پربے ۔ پڑتا ہے ۔ سوجن۔ اس انسان۔ اودھر نہار۔ بچاؤ کے لائق ۔ سنت۔ خدا رسیدہ عابد۔
جو انسان پناہ میں آتا ہے خدا رسیدہ عابد کی اس انسان کا بدکاریوں اور برائیوں سے بچاؤ ہو جاتا ہے ۔ 

 ਸੰਤ ਕੀ ਨਿੰਦਾ ਨਾਨਕਾ ਬਹੁਰਿ ਬਹੁਰਿ ਅਵਤਾਰ ॥੧॥
sant kee nindaa naankaa bahur bahur avtaar. ||1||
O’ Nanak, the one who slanders the Saints, falls into the cycle of birth and death. ||1||
 ਹੇ ਨਾਨਕਸੰਤਾਂ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਕਰਨ ਨਾਲ ਮੁੜ ਮੁੜ ਜੰਮੀਦਾ ਹੈ (ਭਾਵਜਨਮ ਮਰਨ ਦੇ ਚੱਕ੍ਰ ਵਿਚ ਪੈ ਜਾਈਦਾ ਹੈ) 
سنّت کی نِنّدا نانکا بہُرِ بہُرِ اوتار
نندا۔ بدگوئی ۔ نانکا ۔ اے نانک۔ بہور بہور۔ دوبار دوبارہ پیدا ہوتا ہے ۔
اے نانک جو خدا رسیدہ عابد کی بدگوئی کرتا ہے ۔ بار بار جنم لیتا ہے تناسخ میں پڑا رہتا ہے ۔

 ਅਸਟਪਦੀ ॥
asatpadee.
Ashtapadee:
اسٹپدی
 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਆਰਜਾ ਘਟੈ ॥
sant kai dookhan aarjaa ghatai.
Part of life spent in slandering the Saints goes to waste.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਕਰਨ ਨਾਲ (ਮਨੁੱਖ ਦੀਉਮਰ (ਵਿਅਰਥ ਹੀਗੁਜ਼ਰਦੀ ਜਾਂਦੀ ਹੈ,
سنّت کےَ دۄُکھنِ آرجا گھٹےَ
سنت کی بدگوئی کرنے سے عمر گھٹ جاتی ہے ۔

 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਜਮ ਤੇ ਨਹੀ ਛੁਟੈ ॥
sant kai dookhan jam tay nahee chhutai.
By slandering the Saints, one does not escape the demon of death.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਕੀਤਿਆਂ ਮਨੁੱਖ ਜਮਾਂ ਤੋਂ ਬਚ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ
سنّت کےَ دۄُکھنِ جم تے نہی چھُٹےَ
سنت کی بدگوئی سے فرشتہ موت سے نجات نہیں ملتی ۔

 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਸੁਖੁ ਸਭੁ ਜਾਇ ॥
sant kai dookhan sukh sabh jaa-ay.
By slandering the Saints all peace is lost.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਕੀਤਿਆਂ ਸਾਰਾ (ਹੀਸੁਖ (ਨਾਸ ਹੋਜਾਂਦਾ ਹੈ,
سنّت کےَ دۄُکھنِ سُکھُ سبھُ جاءِ
سنت کی بدگوئی کرنے سے آرام و آسائش ختم ہوجاتی ہے ۔ 

 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਨਰਕ ਮਹਿ ਪਾਇ ॥
sant kai dookhan narak meh paa-ay.
Slandering the Saints, one falls into hell (suffers in pain).
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਕੀਤਿਆਂ ਮਨੁੱਖ ਨਰਕ ਵਿਚ (ਭਾਵਘੋਰ ਦੁਖਾਂ ਵਿਚਪੈ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
سنّت کےَ دۄُکھنِ نرک مہِ پاءِ
سنت کی بدگوئی کرنے سے عذاب پاتا ہے دکھ سہتا ہے ۔ 

 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਮਤਿ ਹੋਇ ਮਲੀਨ ॥
sant kai dookhan mat ho-ay maleen.
Slandering the Saints, the intellect is polluted.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਕਰਨ ਨਾਲ (ਮਨੁੱਖ ਦੀ) ਮਤਿ ਮੈਲੀ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ,
سنّت کےَ دۄُکھنِ متِ ہۄءِ ملیِن
سنت کی بدگوئی کرنے سے عقل ناپاک ہوجاتی ہے 

 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਸੋਭਾ ਤੇ ਹੀਨ ॥
sant kai dookhan sobhaa tay heen.
Slandering the Saints, one’s reputation is lost.
ਸਾਧੂਆਂ ਤੇ ਦੂਸ਼ਨ ਲਾਉਣ ਨਾਲ ਬੰਦਾ ਆਪਣੀ ਕੀਰਤੀ ਗੁਆ ਲੈਦਾ ਹੈ
سنّت کےَ دۄُکھنِ سۄبھا تے ہیِن
اور بد نامی ہوتی ہے ۔ 

 ਸੰਤ ਕੇ ਹਤੇ ਕਉ ਰਖੈ ਨ ਕੋਇ ॥
sant kay hatay ka-o rakhai na ko-ay.
No one shelters the person accursed by the Saint.
ਸੰਤ ਦੇ ਫਿਟਕਾਰੇ ਹੋਏ ਬੰਦੇ ਦੀ ਕੋਈ ਮਨੁੱਖ ਸਹੈਤਾ ਨਹੀਂ ਕਰਦਾ l 
سنّت کے ہتے کءُ رکھےَ ن کۄءِ
جس پر سنت کی لعنت اور ملامت ہو اسے کوئی بچاتا نہیں۔ 

 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਥਾਨ ਭ੍ਰਸਟੁ ਹੋਇ ॥
sant kai dookhan thaan bharsat ho-ay.
By trying to find faults with the Saints, one’s own heart is polluted.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਾ ਕੀਤਿਆਂ (ਨਿੰਦਕ ਦਾਹਿਰਦਾ ਗੰਦਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
سنّت کےَ دۄُکھنِ تھان بھ٘رسٹُ ہۄءِ
سنت کی بدگوئی کرنے سے گھر بار ملعون ہوجائیگا۔

 ਸੰਤ ਕ੍ਰਿਪਾਲ ਕ੍ਰਿਪਾ ਜੇ ਕਰੈ ॥
sant kirpaal kirpaa jay karai.
But if the Compassionate Saint shows His Kindness,
(ਪਰਜੇ ਕ੍ਰਿਪਾਲ ਸੰਤ ਆਪ ਕਿਰਪਾ ਕਰੇ,
سنّت ک٘رِپال ک٘رِپا جے کرےَ
سنت رحمت کے مالک ہوتے ہیں اگر ان کی رحمت ہوجائے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਸੰਤਸੰਗਿ ਨਿੰਦਕੁ ਭੀ ਤਰੈ ॥੧॥
naanak satsang nindak bhee tarai. ||1||
O’ Nanak, then along with the Saint, even a slanderer is saved. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਸੰਤ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ ਨਿੰਦਕ ਭੀ (ਪਾਪਾਂ ਤੋਂਬਚ ਜਾਂਦਾ ਹੈ l 
نانک سنّتسنّگِ نِنّدکُ بھی ترےَ
نانک سنت کی صحبت سے بدگو بھی کامیابی پاتے ہیں۔

 ਸੰਤ ਕੇ ਦੂਖਨ ਤੇ ਮੁਖੁ ਭਵੈ ॥
sant kay dookhan tay mukh bhavai.
Slandering a saint, one turns away from God.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਾ ਕਰਨ ਨਾਲ ਨਿੰਦਕ ਦਾ ਚੇਹਰਾ ਹੀ ਭ੍ਰਸ਼ਟਿਆ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
سنّت کے دۄُکھن تے مُکھُ بھوےَ
دوکھن۔ دوکہی ۔ بد گو۔ سکھ ۔ منہ ۔ بھوے ۔ ٹیڑھا ہوجاتا ہے ۔
سنت کی بدگوئی کرنے سے مونہ ٹیڑھا ہوجاتا ہے ۔ 

 ਸੰਤਨ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਕਾਗ ਜਿਉ ਲਵੈ ॥
santan kai dookhan kaag ji-o lavai.
Slandering a Saint, one keeps wandering and speaking unpleasantly like crowing of a crow.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਕਰਨ ਨਾਲ ਮਨੁੱਖ (ਥਾਂ ਥਾਂਕਾਂ ਵਾਂਗ ਲਉਂ ਲਉਂ ਕਰਦਾ ਹੈ (ਨਿੰਦਾ ਦੇ ਬਚਨ ਬੋਲਦਾ ਫਿਰਦਾ ਹੈ)
سنّتن کےَ دۄُکھنِ کاگ جِءُ لوےَ
کاگ جیو لو ے ۔ کوے کے مانند۔ کائیں کائیں کرتا ہے ۔
سنت کی بدگوئی کرنے سے کائیں کائیں کرتا ہے ۔

 ਸੰਤਨ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਸਰਪ ਜੋਨਿ ਪਾਇ ॥
santan kai dookhan sarap jon paa-ay.
Slandering the Saints, one is reborn as a snake.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਾ ਕੀਤਿਆਂ (ਖੋਟਾ ਸੁਭਾਉ ਬਣ ਜਾਣ ਤੇਮਨੁੱਖ ਸੱਪ ਦੀ ਜੂਨੇ ਜਾ ਪੈਂਦਾ ਹੈ,
سنّتن کےَ دۄُکھنِ سرپ جۄنِ پاءِ
سرپ ۔ سانپ ۔ جون۔ زندگی
سنت کی بدگوئی کرنے سے سانپ کی سی عادت ہو جاتی ہے ۔ 

 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਤ੍ਰਿਗਦ ਜੋਨਿ ਕਿਰਮਾਇ ॥
sant kai dookhan tarigad jon kirmaa-ay.
Slandering the Saints, one is reborn as a wiggling worm (lower forms of life).
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਕਰਨ ਨਾਲ ਮਨੁੱਖ ਕਿਰਮ ਆਦਿਕ ਨਿੱਕੀਆਂ ਜੂਨਾਂ ਵਿਚ (ਭਟਕਦਾ ਹੈ)
سنّت کےَ دۄُکھنِ ت٘رِگد جۄنِ کِرماءِ
نرگد۔ ٹیڑھی ۔ پیٹ کے بل ۔ چلنے والی ۔ جون۔ زندگی۔ کر ماے ۔ کیڑے
سنت کی بدگوئی کرنے سے پیٹ کے بل چلنے والے کیڑوں جیسا ہو جاتا ہے ۔ 

 ਸੰਤਨ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਤ੍ਰਿਸਨਾ ਮਹਿ ਜਲੈ ॥
santan kai dookhan tarisnaa meh jalai.
Slandering the Saints, one burns in the fire of desire.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਦੇ ਕਾਰਨ (ਨਿੰਦਕਤ੍ਰਿਸਨਾ (ਦੀ ਅੱਗਵਿਚ ਸੜਦਾ ਭੁੱਜਦਾ ਹੈ,
سنّتن کےَ دۄُکھنِ ت٘رِسنا مہِ جلے
ترشنا ۔ خؤاہشات
سنت کی بدگوئی کرنے سے خواہشات میں جلتا ہے ۔ 

 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਸਭੁ ਕੋ ਛਲੈ ॥
sant kai dookhan sabh ko chhalai.
Slanderer of the Saints goes around deceiving everyone.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਦੇ ਕਾਰਨ (ਨਿੰਦਕਹਰੇਕ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਧੋਖਾ ਦੇਂਦਾ ਫਿਰਦਾ ਹੈ
سنّت کےَ دۄُکھنِ سبھُ کۄ چھلے
چھلے ۔ دھوکا دیتا ہے
سنت کی بدگوئی کرنے والا سبھ کو دھوکا دیتا ہے

 ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਤੇਜੁ ਸਭੁ ਜਾਇ ॥
sant kai dookhan tayj sabh jaa-ay.
By hurting the saint all one’s clout dissipates.
ਸੰਤ ਦੀ ਨਿੰਦਿਆ ਕੀਤਿਆਂ ਮਨੁੱਖ ਦਾ ਸਾਰਾ ਤੇਜ ਪ੍ਰਤਾਪ ਹੀ ਨਸ਼ਟ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
سنّت کےَ دۄُکھنِ تیجُ سبھُ جاءِ
تیج ۔ عزت۔ وقار
سنت کو برا کہنے والا وقار اپنا کھو دیتا ہے ۔

 ਸੰਤ ਕੈ ਦੂਖਨਿ ਨੀਚੁ ਨੀਚਾਇ ॥
sant kai dookhan neech neechaa-ay.
Slandering the Saints, one becomes the meanest of the mean.
ਅਤੇ (ਨਿੰਦਕ)ਮਹਾ ਨੀਚ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
سنّت کےَ دۄُکھنِ نیِچُ نیِچاءِ
 نیچ نیچائے ۔ کمینے سے کمینہ
سنت کی بدگوئی کرنے والا ہو کمینوں سے بھی کمینہ ہے ۔ 

 ਸੰਤ ਦੋਖੀ ਕਾ ਥਾਉ ਕੋ ਨਾਹਿ ॥
sant dokhee kaa thaa-o ko naahi.
There is no refuge for the slanderer of the saint.
ਸੰਤਾਂ ਦੀ ਨਿੰਦਾ ਕਰਨ ਵਾਲਿਆਂ ਦਾ ਕੋਈ ਆਸਰਾ ਨਹੀਂ ਰਹਿੰਦਾ l
سنّت دۄکھی کا تھاءُ کۄ ناہِ
تھاؤ۔ ٹھکانہ
سنت کی بدگوئی کرنے والا نہ کوئی ٹھکانہ پاتا ہے