Urdu-Page-278

ਨਾਨਾ ਰੂਪ ਜਿਉ ਸ੍ਵਾਗੀ ਦਿਖਾਵੈ ॥
naanaa roop ji-o savaagee dikhaavai.
Like a performer, he is seen assuming various disguises.
ਬਹੁਰੂਪੀਏ ਵਾਂਗ ਕਈ ਤਰ੍ਹਾਂ ਦੇ ਰੂਪ ਵਿਖਾ ਰਿਹਾ ਹੈ,
نانا رۄُپ جِءُ س٘واگی دِکھاوےَ
 بہر وپیئے کی مانند طرح طرح کے بھیس دکھاتا ہے ۔ 

 ਜਿਉ ਪ੍ਰਭ ਭਾਵੈ ਤਿਵੈ ਨਚਾਵੈ ॥
ji-o parabh bhaavai tivai nachaavai.
As it pleases God, He makes the mortal dance accordingly.
ਜਿਉਂ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਭਾਉਂਦਾ ਹੈ ਤਿਵੇਂ (ਜੀਵਾਂ ਨੂੰਨਚਾਉਂਦਾ ਹੈ
جِءُ پ٘ربھ بھاوےَ تِوےَ نچاوےَ
جیسے ہے رضا خدا کی ویسے ناچ نچاتا ہے ۔ 

 ਜੋ ਤਿਸੁ ਭਾਵੈ ਸੋਈ ਹੋਇ ॥
jo tis bhaavai so-ee ho-ay.
Whatever pleases Him, happens.
ਉਹੀ ਹੁੰਦਾ ਹੈ ਜੋ ਉਸ (ਮਾਲਕਨੂੰ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ
جۄ تِسُ بھاوےَ سۄئی ہۄءِ
جو چاہتا ہے وہ ہوتا ہے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਦੂਜਾ ਅਵਰੁ ਨ ਕੋਇ ॥੭॥
naanak doojaa avar na ko-ay. ||7||
O’ Nanak, there is none other like Him. ||7||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਉਸ ਵਰਗਾਕੋਈ ਹੋਰ ਦੂਜਾ ਨਹੀਂ ਹੈ l
نانک دۄُجا اورُ ن کۄءِ
اس کے بغیر نہیں کوئی دوسری بات یہ نانک کہتا ہے ۔

 ਕਬਹੂ ਸਾਧਸੰਗਤਿ ਇਹੁ ਪਾਵੈ ॥
kabhoo saaDhsangat ih paavai.
When this person attains the Company of the Holy.
ਕਦੇ ਇਹ ਜੀਵ ਸਤਸੰਗਿ ਵਿਚ ਅੱਪੜਦਾ ਹੈ, 
کبہۄُ سادھسنّگتِ اِہُ پاوےَ
سادھ سنگت۔ صحبت و قرقبت پاکدامناں۔
کبھی صحبت و قربت پاکدامناں پاتاہے انسان ۔ 

 ਉਸੁ ਅਸਥਾਨ ਤੇ ਬਹੁਰਿ ਨ ਆਵੈ ॥
us asthaan tay bahur na aavai.
then he does not come out of that joyful state of mind,
ਤਾਂ ਉਸ ਥਾਂ ਤੋਂ ਮੁੜ ਵਾਪਸ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦਾ;
اُسُ استھان تے بہُرِ ن آوےَ
استھان ۔ مقام ۔ ٹھکانہ
اس مقام سے کبھی واپس نہیں آتا۔ 

 ਅੰਤਰਿ ਹੋਇ ਗਿਆਨ ਪਰਗਾਸੁ ॥
antar ho-ay gi-aan pargaas.
Because, in that company his mind gets illuminated with divine knowledge,
(ਕਿਉਂਕਿਇਸ ਦੇ ਅੰਦਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗਿਆਨ ਦਾ ਪਰਕਾਸ਼ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
انّترِ ہۄءِ گِیان پرگاسُ
پر گاس۔ روشن ۔ علم کی روشنی
انسان اسکا دل جب گیان سے پر نور ہوجاتا ہے ۔ 

 ਉਸੁ ਅਸਥਾਨ ਕਾ ਨਹੀ ਬਿਨਾਸੁ ॥
us asthaan kaa nahee binaas.
and that enlightened state of mind never perishes.
(ਤੇਉਸ (ਗਿਆਨ ਦੇ ਪਰਕਾਸ਼ ਵਾਲੀਹਾਲਤ ਦਾ ਨਾਸ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ;
اُسُ استھان کا نہی بِناسُ
بناس۔ لافناہ
وہ مقام لافناہ ہوجاتا ہے ۔ 

 ਮਨ ਤਨ ਨਾਮਿ ਰਤੇ ਇਕ ਰੰਗਿ ॥
man tan naam ratay ik rang.
(In this state) one’s body and mind are imbued with the love for God,
ਉਸ ਦੀ ਜਿੰਦ ਤੇ ਦੇਹਿ ਇਕ ਦੇ ਨਾਮ ਦੇ ਪ੍ਰੇਮ ਨਾਲ ਰੰਗੇ ਹੋਏ ਹਨ,
من تن نامِ رتے اِک رنّگِ
من تن ۔ دل وجان۔ رتے ۔ محو۔ اک رنگ ۔ وحدت کی پیار میں
دل وجان الہٰی نام میں محو ہوجاتے ہیں۔ الہٰی پیار میں مسرور ہوجاتے ہیں ۔ 

 ਸਦਾ ਬਸਹਿ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਕੈ ਸੰਗਿ ॥
sadaa baseh paarbarahm kai sang.
and he forever dwells with the Supreme God.
ਉਹ ਹਮੇਸ਼ਾਂ ਸ਼ਰੋਮਣੀ ਸਾਹਿਬ ਦੇ ਨਾਲ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ 
سدا بسہِ پارب٘رہم کےَ سنّگِ
پار برہم کے سنگ۔ خدا کے ساتھ
ذات الہٰی کا وصل پاکر۔ ساتھ الہٰی ہوجاتا ہے ۔ 

 ਜਿਉ ਜਲ ਮਹਿ ਜਲੁ ਆਇ ਖਟਾਨਾ ॥
ji-o jal meh jal aa-ay khataanaa.
Just as water blends with water,
ਜਿਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਪਾਣੀ  ਕੇ ਪਾਣੀ ਨਾਲ ਮਿਲ ਜਾਂਦਾ ਹੈ, 
جِءُ جل مہِ جلُ آءِ کھٹانا
کھٹانا۔ مل جاتا ہے
جیسے پانی سے پانی مل کر پہلی پہچان گنوا دیتا ہے ۔

 ਤਿਉ ਜੋਤੀ ਸੰਗਿ ਜੋਤਿ ਸਮਾਨਾ ॥
ti-o jotee sang jot samaanaa.
similarly his enlightened soul blends with the Supreme soul.
lਏਸੇ ਤਰ੍ਹਾਂ ਹੀ ਉਸ ਦਾ ਨੂਰ ਪਰਮਨੂਰ ਨਾਲ ਅਭੇਦ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
تِءُ جۄتی سنّگِ جۄتِ سمانا
تیؤ۔ ایسے ہی ۔ جوتی ۔ نور۔ سنگ۔ ساتھ ۔ جوت سمانا۔ نور میں نور مل جاتا ہے
ایسے تنور انسانی نور الہٰی سے مل کر پہچان گنوا دیتا ہے ۔ 

 ਮਿਟਿ ਗਏ ਗਵਨ ਪਾਏ ਬਿਸ੍ਰਾਮ ॥
mit ga-ay gavan paa-ay bisraam.
His cycle of birth and death ceases, and he attains eternal peace.
ਉਸ ਦੇ (ਜਨਮ ਮਰਨ ਦੇਫੇਰੇ ਮੁੱਕ ਜਾਂਦੇ ਹਨ, (ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚਉਸ ਨੂੰ ਟਿਕਾਣਾ ਮਿਲ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
مِٹِ گۓ گون پاۓ بِس٘رام
گون ۔بھٹکنا ۔ بسرام۔ سکون
بھٹکن مٹ جاتی ہے ۔ سکون روحانی پاتا ہے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਦ ਕੁਰਬਾਨ ॥੮॥੧੧॥
naanak parabh kai sad kurbaan. ||8||11||
O’ Nanak, we should dedicate to God forever. ||8||11||
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਸਦਕੇ ਜਾਈਏ 
نانک پ٘ربھ کےَ سد قُربان
سد۔ سدا۔ ہمیشہ ۔ قربان۔ صدقے ۔
نانک۔ پاک خدا صد بار صدقے جاتا ہے ۔

 ਸਲੋਕੁ ॥
salok.
Shalok:
سلۄکُ
 ਸੁਖੀ ਬਸੈ ਮਸਕੀਨੀਆ ਆਪੁ ਨਿਵਾਰਿ ਤਲੇ ॥
sukhee basai maskeenee-aa aap nivaar talay.
By shedding self-conceit, the humble person dwells in peace.
ਗਰੀਬੀ ਸੁਭਾਉ ਵਾਲਾ ਬੰਦਾ ਆਪਾਭਾਵ ਦੂਰ ਕਰ ਕੇਤੇ ਨੀਵਾਂ ਰਹਿ ਕੇ ਸੁਖੀ ਵੱਸਦਾ ਹੈ,
سُکھی بسےَ مسکیِنیِیا آپُ نِوارِ تلے
مسکینیا ۔ عاجز۔ غریبانہ عادات کا مالک ۔ آپا۔ کوئشتا۔ خوئش ۔
خودی مٹا کر جو عاجز کہلاتا ہے ۔ آخر وہ سکھ پاتا ہے ۔ 

 ਬਡੇ ਬਡੇ ਅਹੰਕਾਰੀਆ ਨਾਨਕ ਗਰਬਿ ਗਲੇ ॥੧॥
baday baday ahaNkaaree-aa nanak garab galay. ||1||
O’ Nanak, mighty arrogant people are consumed by their own pride. ||1||
ਵੱਡੇ ਵੱਡੇ ਅਹੰਕਾਰੀ ਮਨੁੱਖਹੇ ਨਾਨਕਅਹੰਕਾਰ ਵਿਚ ਹੀ ਗਲ ਜਾਂਦੇ ਹਨ l 
بڈے بڈے اہنّکاریِیا نانک گربِ گلے
 اہنکاریا۔ تکبر کرنے والے ۔ مغرور۔ گربھ ۔تکبر ۔ غرور۔ گلے ۔ مٹ گئے
اے نانک ، طاقتور متکبر لوگ اپنے ہی غرور سے دوچار ہیں۔

 ਅਸਟਪਦੀ ॥
asatpadee.
Ashtapadee:
اسٹپدی
 ਜਿਸ ਕੈ ਅੰਤਰਿ ਰਾਜ ਅਭਿਮਾਨੁ ॥
jis kai antar raaj abhimaan.
The one who becomes egotistically proud of possessions and power in the mind,
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਰਾਜ ਦਾ ਹੰਕਾਰ ਹੈ,
جِس کےَ انّترِ راج ابھِمانُ
ابھیمان۔ ناز ۔ تکبر
جس کے دل میں غرور حکومت کا 

 ਸੋ ਨਰਕਪਾਤੀ ਹੋਵਤ ਸੁਆਨੁ ॥
so narakpaatee hovat su-aan.
is liable to the punishment like a dog in hell.
ਉਹ ਕੁੱਤਾ ਨਰਕ ਵਿਚ ਪੈਣ ਦਾ ਸਜ਼ਾਵਾਰ ਹੁੰਦਾ ਹੈ
سۄ نرکپاتی ہۄوت سُیانُ
نرک پانی ۔ دوزخ کا حقدار ۔ سیان ۔ کتا۔
 وہ کتے کی مانند دوزخ میں جائیگا ۔ 

 ਜੋ ਜਾਨੈ ਮੈ ਜੋਬਨਵੰਤੁ ॥
jo jaanai mai jobanvant.
One who egotistically deems himself as youthful and handsome,
ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਬੜਾ ਸੋਹਣਾ ਸਮਝਦਾ ਹੈ, 
جۄ جانےَ مےَ جۄبنونّتُ
جو بن دنت ۔ جوانی پر ناز کرنے والا۔ غرور
جس کو ناز جوانی پر غرور جو کرتا ہے 

 ਸੋ ਹੋਵਤ ਬਿਸਟਾ ਕਾ ਜੰਤੁ ॥
so hovat bistaa kaa jant.
he is like a worm in the filth
ਉਹ ਵਿਸ਼ਟਾ ਦਾ ਹੀ ਕੀੜਾ ਹੁੰਦਾ ਹੈ 
سۄ ہۄوت بِسٹا کا جنّتُ
 بسٹا۔ گندگی ۔ جنت ۔ کیڑا۔
وہ گندگی کا کیڑا ہوجاتا ہے ۔ 

 ਆਪਸ ਕਉ ਕਰਮਵੰਤੁ ਕਹਾਵੈ ॥
aapas ka-o karamvant kahaavai.
The one who calls himself as the doer of pious deeds in ego.
ਜੇਹੜਾ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਚੰਗੇ ਕੰਮ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਅਖਵਾਉਂਦਾ ਹੈ,
آپس کءُ کرمونّتُ کہاوےَ
کرم ونت ۔ نیک اعمال
جس کو ناز ہے اپنے اعمالوں پر اور خود کو عامل کہتا ہے ۔ 

 ਜਨਮਿ ਮਰੈ ਬਹੁ ਜੋਨਿ ਭ੍ਰਮਾਵੈ ॥
janam marai baho jon bharmaavai.
Keeps suffering in the cycles of birth and death.
ਉਹ ਸਦਾ ਜੰਮਦਾ ਮਰਦਾ ਹੈਕਈ ਜੂਨਾਂ ਵਿਚ ਭਟਕਦਾ ਫਿਰਦਾ ਹੈ 
جنمِ مرےَ بہُ جۄنِ بھ٘رماوےَ
جنم مرے ۔ پیدا ہوتا ہے مرجاتا ہے ۔ تناسخ میں رہتا ہے
اس غرور کی بدولت تناسخ میں وہ رہتا ہے ۔ ۔ 

 ਧਨ ਭੂਮਿ ਕਾ ਜੋ ਕਰੈ ਗੁਮਾਨੁ ॥
Dhan bhoom kaa jo karai gumaan.
The one who feels egoistically proud of his wealth and lands
ਜੋ ਆਪਣੀ ਦੌਲਤ ਅਤੇ ਜਮੀਨ ਦਾ ਹੰਕਾਰ ਕਰਦਾ ਹੈ,
دھن بھۄُمِ کا جۄ کرےَ گُمانُ
گمان۔ غرور۔ ناز۔ بھوم ۔ زمین
جس کو ناز ہے دولت اور زمین کا 

 ਸੋ ਮੂਰਖੁ ਅੰਧਾ ਅਗਿਆਨੁ ॥
so moorakh anDhaa agi-aan.
is a foolish, blind and ignorant.
ਉਹ ਮੂਰਖ ਹੈਅੰਨ੍ਹਾ ਹੈਬੜਾ ਜਾਹਿਲ ਹੈ
سۄ مۄُرکھُ انّدھا اگِیانُ
 مورکھ ۔ بے تھل۔ اگیان۔ لا علم۔ جاہل
وہ کم عقل ہے او ر جاہل ہے ۔ 

 ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਜਿਸ ਕੈ ਹਿਰਦੈ ਗਰੀਬੀ ਬਸਾਵੈ ॥
kar kirpaa jis kai hirdai gareebee basaavai.
The one, in whose heart God mercifully instills humility,
ਮੇਹਰ ਕਰ ਕੇ ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਦਿਲ ਵਿਚ ਗਰੀਬੀ (ਸੁਭਾਉਪਾਂਦਾ ਹੈ, 
کرِ کِرپا جِس کےَ ہِردےَ غریِبی بساوےَ
 غریبی ۔ عاجزی ۔مسکینی ۔ ہر دے۔ دل میں
جس کے دل میں اپنی رحمت سے خدا مسکینی دیتا ہے ۔ 

 ਨਾਨਕ ਈਹਾ ਮੁਕਤੁ ਆਗੈ ਸੁਖੁ ਪਾਵੈ ॥੧॥
naanak eehaa mukat aagai sukh paavai. ||1||
O Nanak, he is liberated here from vices, and obtains peace hereafter. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਉਹ ਮਨੁੱਖਇਸ ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਵਿਚ ਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂ ਬਚਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ਤੇ ਪਰਲੋਕ ਵਿਚ ਸੁਖ ਪਾਂਦਾ ਹੈ l
نانک ایِہا مُکتُ آگےَ سُکھُ پاوےَ
ایہاں ۔ یہاں۔ مکت۔ نجات۔ آزادی
اے نانک اس عالم میں نجات و آزادی اور آئندہ بھی سکھ پاتا ہے 

 ਧਨਵੰਤਾ ਹੋਇ ਕਰਿ ਗਰਬਾਵੈ ॥
Dhanvantaa ho-ay kar garbaavai.
Upon becoming wealthy, one feels egoistically proud of his riches,
ਮਨੁੱਖ ਧਨ ਵਾਲਾ ਹੋ ਕੇ ਆਪਣੀ ਦੌਲਤ ਦਾ ਗੁਮਾਨ ਕਰਦਾ ਹੈ, 
دھنونّتا ہۄءِ کرِ گرباوےَ
دھنونتا۔ دولتمند۔ سرمایہ دار۔ گر بھاوے ۔ غرور کرتا ہے 
جو سرمایہ دار ہوکر سرمایہ کی کرتا ہے مغروری 

 ਤ੍ਰਿਣ ਸਮਾਨਿ ਕਛੁ ਸੰਗਿ ਨ ਜਾਵੈ ॥
tarin samaan kachh sang na jaavai.
must realize that nothing shall go with him in the end, not even a straw.
ਉਸ ਦੇ ਨਾਲ ਅੰਤ ਵੇਲੇ ਇਕ ਤੀਲੇ ਜਿਤਨੀ ਭੀ ਕੋਈ ਚੀਜ਼ ਨਹੀਂ ਜਾਂਦੀ
ت٘رِݨ سمانِ کچھُ سنّگِ ن جاوےَ
ترن تنکا۔ سمان۔ برابر ۔سنگ ۔ ساتھ
 تنکے برابرکوئی چیز نہیں جاتی ساتھ 

 ਬਹੁ ਲਸਕਰ ਮਾਨੁਖ ਊਪਰਿ ਕਰੇ ਆਸ ॥
baho laskar maanukh oopar karay aas.
He may place his hopes on a large army and men,
ਬਹੁਤੇ ਲਸ਼ਕਰ ਅਤੇ ਮਨੁੱਖਾਂ ਉਤੇ ਬੰਦਾ ਆਸਾਂ ਲਾਈ ਰੱਖਦਾ ਹੈ, 
بہُ لشکر مانُکھ اۄُپرِ کرے آس
لشکر ۔ فوج۔ مانکھ ۔ انسان۔ آس ۔ اُمید
جو فوجووں اور لشکر کی بہتات پر امیدیں باندھتا ہے ۔ 

 ਪਲ ਭੀਤਰਿ ਤਾ ਕਾ ਹੋਇ ਬਿਨਾਸ ॥
pal bheetar taa kaa ho-ay binaas.
(should know that) all these things are destroyed in an instant
ਪਲਕ ਵਿਚ ਉਸ ਦਾ ਨਾਸ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
پل بھیِترِ تا کا ہۄءِ بِناس
پل بھیتر ۔ پل بھر میں۔ وناس۔ فناہ ۔
پل بھر میں وہ فناہ و تباہ ہوجاتی ہے 

 ਸਭ ਤੇ ਆਪ ਜਾਨੈ ਬਲਵੰਤੁ ॥
sabh tay aap jaanai balvant.
The one who deems himself to be the strongest of all,
ਜੋ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਸਾਰਿਆਂ ਨਾਲੋਂ ਜ਼ੋਰਾਵਰ ਸਮਝਦਾ ਹੈ, 
سبھ تے آپ جانےَ بلونّتُ
بلونت ۔ طاقتور
 جو خود کو طاقتور سمجھ کر طاقت پر اتراتا ہے ۔

 ਖਿਨ ਮਹਿ ਹੋਇ ਜਾਇ ਭਸਮੰਤੁ ॥
khin meh ho-ay jaa-ay bhasmant.
in an instant that one may be reduced to ashes.
ਇਕ ਖਿਣ ਵਿਚ (ਸੜ ਕੇਸੁਆਹ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
کھِن مہِ ہۄءِ جاءِ بھسمنّتُ
کھن مینہہ۔ پل بھر میں۔ ھسنمت ۔ خاک میں مل جاتا ہے ۔
پل بھر میں وہ خاک میں مل جاتا ہے ۔ 

 ਕਿਸੈ ਨ ਬਦੈ ਆਪਿ ਅਹੰਕਾਰੀ ॥
kisai na badai aap ahaNkaaree.
The one who is so haughty and does not care for anyone else,
ਜੋ ਆਪ ਇਤਨਾ ਅਹੰਕਾਰੀ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਕਿ ਕਿਸੇ ਦੀ ਭੀ ਪਰਵਾਹ ਨਹੀਂ ਕਰਦਾ,
کِسےَ ن بدےَ آپِ اہنّکاری
بدے ۔ پرواہ نہیں کرتا ۔ اہنکا ری ۔ مغرور
جو پرواہ نہیں کرتا کسی کی تکبر کرتا ہے 

 ਧਰਮ ਰਾਇ ਤਿਸੁ ਕਰੇ ਖੁਆਰੀ ॥
Dharam raa-ay tis karay khu-aaree.
Is badly disgraced by the Righteous Judge.
ਧਰਮਰਾਜ (ਅੰਤ ਵੇਲੇਉਸ ਦੀ ਮਿੱਟੀ ਪਲੀਤ ਕਰਦਾ ਹੈ
دھرم راءِ تِسُ کرے خُیاری
دھرم رائے ۔ الہٰی منصف۔ فرشتہ انصاف ۔ خواری۔ ذلیل
منصف الہٰی اسے ذلیل وخووار کرتا ہے ۔ 

 ਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ਜਾ ਕਾ ਮਿਟੈ ਅਭਿਮਾਨੁ ॥
gur parsaad jaa kaa mitai abhimaan.
The one whose ego is eliminated by the Guru’s grace,
ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਦਇਆ ਨਾਲ ਜਿਸ ਦਾ ਅਹੰਕਾਰ ਮਿਟਦਾ ਹੈ,
گُر پ٘رسادِ جا کا مِٹےَ ابھِمانُ
ابھیمان۔ تکبر
رحمت مرشد سے جسکا غرور مٹ جائے ۔ 

 ਸੋ ਜਨੁ ਨਾਨਕ ਦਰਗਹ ਪਰਵਾਨੁ ॥੨॥
so jan naanak dargeh parvaan. ||2||
O’ Nanak, that person is approved in God’s court.||2||
 ਹੇ ਨਾਨਕਉਹ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਦਰਗਾਹ ਵਿਚ ਕਬੂਲ ਹੁੰਦਾ ਹੈ l
سۄ جنُ نانک درگہ پروانُ
درگہ۔ الہٰی دربار ۔ پروان۔ قبول ۔ منظور
ایسا انسان اے نانک بارگاہ الہٰی قبولیت پاتا ہے ۔ 

 ਕੋਟਿ ਕਰਮ ਕਰੈ ਹਉ ਧਾਰੇ ॥
kot karam karai ha-o Dhaaray.
If one performs millions of good deeds and also feels egotistically proud of those deeds,
ਜੇਕਰ ਬੰਦਾ ਕ੍ਰੋੜਾਂ ਚੰਗੇ ਕੰਮ ਕਰਦਾ ਹੋਇਆ ਹੰਕਾਰ ਕਰੇ,
کۄٹِ کرم کرےَ ہءُ دھارے
کرم۔ اعمال ۔ ہوء۔ خودی
اگر کوئی نیکی کے کروڑوں اعمال کیوں نہ کرتا ہو مگر اگر دل میں خودی ہے 

 ਸ੍ਰਮੁ ਪਾਵੈ ਸਗਲੇ ਬਿਰਥਾਰੇ ॥
saram paavai saglay birthaaray.
that person is only doing hard labor, and all those deeds are a waste.
ਉਹ ਤਕਲੀਫ ਹੀ ਉਠਾਉਂਦਾ ਹੈ ਤੇ ਉਸ ਦੇ ਸਾਰੇ ਕੰਮ ਵਿਅਰਥ ਹਨ 
س٘رمُ پاوےَ سگلے بِرتھارے
سرم۔ محنت و مشقت۔ ماند۔ برتھارے ۔ بیکار۔ بےفائدہ
تو ساری محنت و مشقت بیکار ہے ۔

 ਅਨਿਕ ਤਪਸਿਆ ਕਰੇ ਅਹੰਕਾਰ ॥
anik tapasi-aa karay ahaNkaar.
The one, who performs myriads of penances and indulges in ego ,
ਅਨੇਕਾਂ ਤਪ ਦੇ ਸਾਧਨ ਕਰ ਕੇ ਜੇ ਇਹਨਾਂ ਦਾ ਮਾਣ ਕਰੇ, 
انِک تپسِیا کرے اہنّکار
تپسیا۔ عبادت
خواہ بیشمار عبادت اور ریاضت کرتے ہو مگر دل میں غرور ہے ۔

 ਨਰਕ ਸੁਰਗ ਫਿਰਿ ਫਿਰਿ ਅਵਤਾਰ ॥
narak surag fir fir avtaar.
keeps enduring pain and pleasure, as if going through heaven and hell again and again
ਤਾਂ ਉਹ ਨਰਕਾਂ ਸੁਰਗਾਂ ਵਿਚ ਹੀ ਮੁੜ ਮੁੜ ਜੰਮਦਾ ਹੈ (ਭਾਵਕਦੇ ਸੁਖ ਤੇ ਕਦੇ ਦੁਖ ਭੋਗਦਾ ਹੈ) 
نرک سُرگ پھِرِ پھِرِ اوتار
 نرک۔ دوزخ۔ سورگ۔ جنت۔ بہشت۔ اوتار۔ پیدا ہوتا ہے ۔
تو کبھی دوزخ اور کبھی بہشت میں بھٹکتے رہو گے 

 ਅਨਿਕ ਜਤਨ ਕਰਿ ਆਤਮ ਨਹੀ ਦ੍ਰਵੈ ॥
anik jatan kar aatam nahee darvai.
If in spite of making numerous efforts, one does not become become tender and compassionate,
ਜਿਸ ਦਾ ਹਿਰਦਾਬਹੁਤੇ ਉਪਰਾਲੇ ਕਰਨ ਦੇ ਬਾਵਜੂਦ ਭੀ ਨਰਮ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ, 
انِک جتن کرِ آتم نہی د٘روےَ
انک جتن۔ بیشمار کوشش۔ آتم۔ روح۔ نہیں دروے ۔ نرم نہیں ہوتی
 بیشمار کوشش کرنے کے با وجود اگر دل نرم نہیں ہوتا 

 ਹਰਿ ਦਰਗਹ ਕਹੁ ਕੈਸੇ ਗਵੈ ॥
har dargeh kaho kaisay gavai.
then how can he reach God’s court?
ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਦਰਗਾਹ ਵਿਚ ਕਿਵੇਂ ਪਹੁੰਚ ਸਕਦਾ ਹੈ?
ہرِ درگہ کہُ کیَسے گوےَ
گوے ۔ جائیگا
تو الہٰی درگاہ میں کیسے رسائی حاصل ہوگی ۔ 

 ਆਪਸ ਕਉ ਜੋ ਭਲਾ ਕਹਾਵੈ ॥
aapas ka-o jo bhalaa kahaavai.
One who claims to be virtuous,
ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਨੇਕ ਅਖਵਾਉਂਦਾ ਹੈ,
آپس کءُ جۄ بھلا کہاوےَ
بھلا ۔ نیک
جو دل میں خود کو نیک کہلاتا ہے 

 ਤਿਸਹਿ ਭਲਾਈ ਨਿਕਟਿ ਨ ਆਵੈ ॥
tiseh bhalaa-ee nikat na aavai.
virtue does not even touch that one.
ਨੇਕੀ ਉਸ ਦੇ ਨੇੜੇ ਭੀ ਨਹੀਂ ਢੁੱਕਦੀ
تِسہِ بھلائی نِکٹِ ن آوےَ
بھلائی ۔ نیکی ۔ نکٹ۔ نزدیک
 مگر نیکی اس کے نزدیک نہیں پھٹکتی ۔ 

 ਸਰਬ ਕੀ ਰੇਨ ਜਾ ਕਾ ਮਨੁ ਹੋਇ ॥
sarab kee rayn jaa kaa man ho-ay.
The one whose mind becomes humble to all,
 ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦਾ ਮਨ ਸਭਨਾਂ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਦੀ ਧੂੜ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
سرب کی رین جا کا منُ ہۄءِ
رین۔ دھول۔ من۔ دل
جو اپنے آپ کو سب کے پاؤں کی دھول سمجھتا ہے ۔ 

 ਕਹੁ ਨਾਨਕ ਤਾ ਕੀ ਨਿਰਮਲ ਸੋਇ ॥੩॥
kaho naanak taa kee nirmal so-ay. ||3||
O’ Nanak, his reputation is spotlessly pure.||3||
ਆਖਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਮਨੁੱਖ ਦੀ ਸੋਹਣੀ ਸੋਭਾ ਖਿਲਰਦੀ ਹੈ 
کہُ نانک تا کی نِرمل سۄءِ
نرمل سوئے ۔ پاک شہرت
 اے نانک بتادے وہ نیک شہرت پاتا ہے ۔ 

 ਜਬ ਲਗੁ ਜਾਨੈ ਮੁਝ ਤੇ ਕਛੁ ਹੋਇ ॥
jab lag jaanai mujh tay kachh ho-ay.
As long as one thinks that he can make something happen with his power,
ਮਨੁੱਖ ਜਦ ਤਕ ਇਹ ਸਮਝਦਾ ਹੈ ਕਿ ਮੈਥੋਂ ਕੁਝ ਹੋ ਸਕਦਾ ਹੈ,
جب لگُ جانےَ مُجھ تے کچھُ ہۄءِ
جب تگ۔ جب تک
جب تک انسان سمجھتا ہے کہ میں ہی سب کچھ کرنے والا ہوں 

 ਤਬ ਇਸ ਕਉ ਸੁਖੁ ਨਾਹੀ ਕੋਇ ॥
tab is ka-o sukh naahee ko-ay.
till then that person cannot obtain peace.
ਤਦ ਤਾਈਂ ਇਸ ਨੂੰ ਕੋਈ ਸੁਖ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ
تب اِس کءُ سُکھُ ناہی کۄءِ
تب۔ اسوقت تک 
 تب تک اسے سکھ نہیں چین نہیں آرام نہ ملتا ہے 

 ਜਬ ਇਹ ਜਾਨੈ ਮੈ ਕਿਛੁ ਕਰਤਾ ॥
jab ih jaanai mai kichh kartaa.
As long as this mortal thinks that he is the doer of any task,
ਜਦ ਤਕ ਇਹ ਸਮਝਦਾ ਹੈ ਕਿ ਮੈਂ (ਆਪਣੇ ਬਲ ਨਾਲਕੁਝ ਕਰਦਾ ਹਾਂ,
جب اِہ جانےَ مےَ کِچھُ کرتا
 جب انسان یہ سمجھتا ہے کہ میں کر رہا ہوں 

 ਤਬ ਲਗੁ ਗਰਭ ਜੋਨਿ ਮਹਿ ਫਿਰਤਾ ॥
tab lag garabh jon meh firtaa.
till then, he wanders in the cycles of birth and death.
ਤਦ ਤਕ (ਵੱਖਰਾਪਨ ਦੇ ਕਾਰਣਜੂਨਾਂ ਵਿਚ ਪਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
تب لگُ گربھ جۄنِ مہِ پھِرتا
تو انسان الہٰی جدائی کی وجہ سے بھٹکن اور دوڑ دھوپ میں رہتا ہے ۔ 

 ਜਬ ਧਾਰੈ ਕੋਊ ਬੈਰੀ ਮੀਤੁ ॥
jab Dhaarai ko-oo bairee meet.
As long as he considers one an enemy, and another a friend,
ਜਦ ਤਕ ਮਨੁੱਖ ਕਿਸੇ ਨੂੰ ਵੈਰੀ ਤੇ ਕਿਸੇ ਨੂੰ ਮਿਤ੍ਰ ਸਮਝਦਾ ਹੈ,
جب دھارےَ کۄئۄُ بیَری میِتُ
 دھارے ۔ دل میں سوچتا ہے ۔ دہری ۔ دشمن۔ میت۔ دوست
جب تک انسان کسی کو دوست کسی کو دشمن سمجھتا ہے ۔ 

 ਤਬ ਲਗੁ ਨਿਹਚਲੁ ਨਾਹੀ ਚੀਤੁ ॥
tab lag nihchal naahee cheet.
till then that person’s mind will not become steady and peaceful.
ਤਦ ਤਕ ਇਸ ਦਾ ਮਨ ਟਿਕਾਣੇ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦਾ
تب لگُ نِہچلُ ناہی چیِتُ
نہچل۔ مستقل۔ چیت ۔ دل
تب تک اس کے من اور سوچ میں مستقل مزاجی نہیں رہتی ۔ 

 ਜਬ ਲਗੁ ਮੋਹ ਮਗਨ ਸੰਗਿ ਮਾਇ ॥
jab lag moh magan sang maa-ay.
As long as he is engrossed in Maya (worldly riches),
ਜਦ ਤਕ ਬੰਦਾ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਗ਼ਰਕ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ,
جب لگُ مۄہ مگن سنّگِ ماءِ
موہ مگن سنگ مائے ۔ جب تک انسان دولت کی محبت میں مست ہے
جب تک انسان محبت میں سر شار رہتا ہے 

 ਤਬ ਲਗੁ ਧਰਮ ਰਾਇ ਦੇਇ ਸਜਾਇ ॥
tab lag Dharam raa-ay day-ay sajaa-ay.
the Righteous Judge keeps administering punishment.
ਤਦ ਤਕ ਇਸ ਨੂੰ ਧਰਮਰਾਜ ਡੰਡ ਦੇਂਦਾ ਹੈ
تب لگُ دھرمُ راءِ دےءِ سزاءِ
دھرم رائے ۔ الہٰی منصف۔ انسانیت کا منصف۔ سزائے ۔ ساز
 تب تک الہٰی منصف انصاف انسان کو سزا دیتا رہتا ہے 

 ਪ੍ਰਭ ਕਿਰਪਾ ਤੇ ਬੰਧਨ ਤੂਟੈ ॥
parabh kirpaa tay banDhan tootai.
The bonds of Maya (worldly attachments) are shattered by God’s Grace,
ਮਾਇਆ ਦੇ ਬੰਧਨ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਮੇਹਰ ਨਾਲ ਟੁੱਟਦੇ ਹਨ,
پ٘ربھ کِرپا تے بنّدھن تۄُٹےَ
ا بندھن۔ بندھش ۔ غلامی
الہٰی کرم و عنایت اور رحمت سے انسان کی غلامی ختم ہوتی ہے ۔ 

 ਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ਨਾਨਕ ਹਉ ਛੂਟੈ ॥੪॥
gur parsaad naanak ha-o chhootai. ||4||
O’ Nanak, a person’s ego is eliminated by the grace of the Guru . ||4||
ਹੇ ਨਾਨਕਮਨੁੱਖ ਦੀ ਹਉਮੈ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮੁੱਕਦੀ ਹੈ 
گُر پ٘رسادِ نانک ہءُ چھۄُٹےَ
گر پرساد۔ رحمت مرشد سے ۔ ہوء ۔ خودی
اور انسان کی خودی رحمت مرشد سے مٹتی ہے اے نانک۔

 ਸਹਸ ਖਟੇ ਲਖ ਕਉ ਉਠਿ ਧਾਵੈ ॥
sahas khatay lakh ka-o uth Dhaavai.
After earning a thousand, he runs after million.
ਮਨੁੱਖ ਹਜ਼ਾਰਾਂ ਰੁਪਏ ਕਮਾਉਂਦਾ ਹੈ ਤੇ ਲੱਖਾਂ ਰੁਪਇਆਂ ਦੀ ਖ਼ਾਤਰ ਉੱਠ ਦੌੜਦਾ ਹੈ l 
سہس کھٹے لکھ کءُ اُٹھِ دھاوےَ
سہس۔ ہزاروں۔ دھاوے ۔ دوڑتا ہے
ہزاروں کمانے کے بعد لاکھوں کے لئے دوڑنا ہے