Guru Granth Sahib Translation Project

Guru Granth Sahib Urdu Page 186

Page 186

ਪੀਊ ਦਾਦੇ ਕਾ ਖੋਲਿ ਡਿਠਾ ਖਜਾਨਾ ॥ جب میں نے اپنے والد اور دادا کے خزانے یعنی گرؤوں کے کلام کے خزانے کو کھول کر دیکھا
ਤਾ ਮੇਰੈ ਮਨਿ ਭਇਆ ਨਿਧਾਨਾ ॥੧॥ تو میرے دل میں خوشی کا ذخیرہ بھر گیا۔ 1۔
ਰਤਨ ਲਾਲ ਜਾ ਕਾ ਕਛੂ ਨ ਮੋਲੁ ॥ ਭਰੇ ਭੰਡਾਰ ਅਖੂਟ ਅਤੋਲ ॥੨॥ تعریف کے انمول نگینوں اور جواہرات سےغیر فانی اور وزن سے پرے خزانے بھرے ہوئے ہیں۔ 2۔
ਖਾਵਹਿ ਖਰਚਹਿ ਰਲਿ ਮਿਲਿ ਭਾਈ ॥ اے بھائی! ہم سبھی مل کر ان ذخائر کو کام میں لاتے اور استعمال کرتے ہیں۔
ਤੋਟਿ ਨ ਆਵੈ ਵਧਦੋ ਜਾਈ ॥੩॥ اس خزانے میں کوئی کمی نہیں اور یہ دن بہ دن بڑھتا ہی جا تا ہے۔ 3۔
ਕਹੁ ਨਾਨਕ ਜਿਸੁ ਮਸਤਕਿ ਲੇਖੁ ਲਿਖਾਇ ॥ اے نانک! وہ ہستی جس کی پیشانی پر خالق نے قسمت کی ایسی مبارک تحریریں لکھی ہیں
ਸੁ ਏਤੁ ਖਜਾਨੈ ਲਇਆ ਰਲਾਇ ॥੪॥੩੧॥੧੦੦॥ وہ اس (فضائل کی تعریف کے) خزانے میں حصے دار بن جاتا ہے۔4‌۔ 31۔100۔
ਗਉੜੀ ਮਹਲਾ ੫ ॥ گؤڑی محلہ 5
ਡਰਿ ਡਰਿ ਮਰਤੇ ਜਬ ਜਾਨੀਐ ਦੂਰਿ ॥ جب میں رب کو دور سمجھتا تھا تو ڈر ڈر کے مرتا رہتا تھا۔
ਡਰੁ ਚੂਕਾ ਦੇਖਿਆ ਭਰਪੂਰਿ ॥੧॥ اس رب کو ہمہ گیر دیکھ کر میرا خوف دور ہو گیا ہے۔ 1۔
ਸਤਿਗੁਰ ਅਪਨੇ ਕਉ ਬਲਿਹਾਰੈ ॥ میں اپنے ست گرو پر قربان جاتا ہوں۔
ਛੋਡਿ ਨ ਜਾਈ ਸਰਪਰ ਤਾਰੈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥ مجھے چھوڑ کر وہ کہیں نہیں جاتا اور ضرور ہی مجھے دنیوی سمندر سے پار کردےگا۔ 1۔ وقفہ
ਦੂਖੁ ਰੋਗੁ ਸੋਗੁ ਬਿਸਰੈ ਜਬ ਨਾਮੁ ॥ جب مخلوق واہےگرو کے نام کو بھلا دیتی ہے تو اسے دکھ، بیماری اور مصائب لگ جاتے ہیں۔
ਸਦਾ ਅਨੰਦੁ ਜਾ ਹਰਿ ਗੁਣ ਗਾਮੁ ॥੨॥ لیکن جب وہ رب کی حمد گاتا ہے تو اسے ہمیشہ خوشی ملتی ہے۔ 3۔
ਬੁਰਾ ਭਲਾ ਕੋਈ ਨ ਕਹੀਜੈ ॥ ہمیں کسی کو برا بھلا نہیں کہنا چاہیے۔
ਛੋਡਿ ਮਾਨੁ ਹਰਿ ਚਰਨ ਗਹੀਜੈ ॥੩॥ اور اپنا غرور چھوڑ کر واہےگرو کے قدم پکڑ لینے چاہیے۔ 3۔
ਕਹੁ ਨਾਨਕ ਗੁਰ ਮੰਤ੍ਰੁ ਚਿਤਾਰਿ ॥ نانک کہتے ہیں کہ (اے مخلوق!) گرو کے منتر (تعلیم) کا ذکر کرو۔
ਸੁਖੁ ਪਾਵਹਿ ਸਾਚੈ ਦਰਬਾਰਿ ॥੪॥੩੨॥੧੦੧॥ دربارِ حق میں بڑا آرام ملے گا۔ 4۔ 32۔ 101
ਗਉੜੀ ਮਹਲਾ ੫ ॥ گؤڑی محلہ 5
ਜਾ ਕਾ ਮੀਤੁ ਸਾਜਨੁ ਹੈ ਸਮੀਆ ॥ اے بھائی! جس کا دوست اور ساتھی ہمہ گیر رب ہے۔
ਤਿਸੁ ਜਨ ਕਉ ਕਹੁ ਕਾ ਕੀ ਕਮੀਆ ॥੧॥ مجھے بتائیں کہ اس شخص میں کس چیز کی کمی ہو سکتی ہے۔ 1۔
ਜਾ ਕੀ ਪ੍ਰੀਤਿ ਗੋਬਿੰਦ ਸਿਉ ਲਾਗੀ ॥ جو گووند سے محبت کرتا ہے،
ਦੂਖੁ ਦਰਦੁ ਭ੍ਰਮੁ ਤਾ ਕਾ ਭਾਗੀ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥ اس کے دکھ درد اور فکریں ختم ہو جاتی ہیں۔ 1۔ وقفہ
ਜਾ ਕਉ ਰਸੁ ਹਰਿ ਰਸੁ ਹੈ ਆਇਓ ॥ جس شخص کو ہری رس کا لطف حاصل ہوجاتا ہے،
ਸੋ ਅਨ ਰਸ ਨਾਹੀ ਲਪਟਾਇਓ ॥੨॥ وہ ہری رس کے علاوہ دوسرے رسوں سے نہیں لپٹتا۔ 2۔
ਜਾ ਕਾ ਕਹਿਆ ਦਰਗਹ ਚਲੈ ॥ جس کی بات رب کے دربار میں مانی جاتی ہے
ਸੋ ਕਿਸ ਕਉ ਨਦਰਿ ਲੈ ਆਵੈ ਤਲੈ ॥੩॥ وہ کس کی پرواہ کرتا ہے (یعنی اسے کوئی ضرورت نہیں ہے)۔ 3۔
ਜਾ ਕਾ ਸਭੁ ਕਿਛੁ ਤਾ ਕਾ ਹੋਇ ॥ جس واہےگرو نے کائنات بنائی ہے، حیوانات و جمادات یعنی ساری دنیا اسی کی ہے،
ਨਾਨਕ ਤਾ ਕਉ ਸਦਾ ਸੁਖੁ ਹੋਇ ॥੪॥੩੩॥੧੦੨॥ اے نانک! جو اس واہےگرو کا مرید بن جاتا ہے، اسے ہمیشہ خوشی ملتی ہے۔ 4۔ 33۔ 102۔
ਗਉੜੀ ਮਹਲਾ ੫ ॥ گؤڑی محلہ 5
ਜਾ ਕੈ ਦੁਖੁ ਸੁਖੁ ਸਮ ਕਰਿ ਜਾਪੈ ॥ جس شخص کو دکھ اور سُکھ ایک جیسے لگتے ہیں
ਤਾ ਕਉ ਕਾੜਾ ਕਹਾ ਬਿਆਪੈ ॥੧॥ اسے کوئی فکر کیسے ہو سکتی ہے؟ 1۔
ਸਹਜ ਅਨੰਦ ਹਰਿ ਸਾਧੂ ਮਾਹਿ ॥ جس واہےگرو کے سادھو کے دل میں فطری لطف پیدا ہوجاتا ہے,
ਆਗਿਆਕਾਰੀ ਹਰਿ ਹਰਿ ਰਾਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥ وہ ہمیشہ رب العزت کا فرماں بردار بنا رہتا ہے۔ 1۔ وقفہ۔
ਜਾ ਕੈ ਅਚਿੰਤੁ ਵਸੈ ਮਨਿ ਆਇ ॥ جس کے دل میں بے فکر رب آکر بس جاتا ہے
ਤਾ ਕਉ ਚਿੰਤਾ ਕਤਹੂੰ ਨਾਹਿ ॥੨॥ اسے کبھی فکر نہیں لگتی۔ 2۔
ਜਾ ਕੈ ਬਿਨਸਿਓ ਮਨ ਤੇ ਭਰਮਾ ॥ جس کے دل سے فکر نکل گئی
ਤਾ ਕੈ ਕਛੂ ਨਾਹੀ ਡਰੁ ਜਮਾ ॥੩॥ اسے موت کا ذرہ برابر بھی خوف نہیں رہتا۔ 3۔
ਜਾ ਕੈ ਹਿਰਦੈ ਦੀਓ ਗੁਰਿ ਨਾਮਾ ॥ جس کے دل میں گرودیو نے رب کا نام دیا ہے۔
ਕਹੁ ਨਾਨਕ ਤਾ ਕੈ ਸਗਲ ਨਿਧਾਨਾ ॥੪॥੩੪॥੧੦੩॥ اے نانک! وہ تمام خزانوں کا مالک بن جاتا ہے۔ 4۔ 34۔ 103۔
ਗਉੜੀ ਮਹਲਾ ੫ ॥ گؤڑی محلہ 5
ਅਗਮ ਰੂਪ ਕਾ ਮਨ ਮਹਿ ਥਾਨਾ ॥ لامحدود ہستی واہےگرو کا انسان کے دل میں قیام ہے۔
ਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ਕਿਨੈ ਵਿਰਲੈ ਜਾਨਾ ॥੧॥ گرو کی مہربانی سے اس حقیقت کو کوئی نایاب آدمی ہی سمجھتا ہے۔ 1۔
ਸਹਜ ਕਥਾ ਕੇ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਕੁੰਟਾ ॥ واہےگرو کی فطری کہانی کے امرت برتن ہیں۔
ਜਿਸਹਿ ਪਰਾਪਤਿ ਤਿਸੁ ਲੈ ਭੁੰਚਾ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥ جس کو یہ مل جاتا ہے وہ امرت کا جام پیتا رہتا ہے۔ 1۔ وقفہ
ਅਨਹਤ ਬਾਣੀ ਥਾਨੁ ਨਿਰਾਲਾ ॥ جنت میں ایک شاندار جگہ ہے جہاں ہر لمحہ لامحدود کلام کی میٹھی آواز گونجتی رہتی ہے۔
ਤਾ ਕੀ ਧੁਨਿ ਮੋਹੇ ਗੋਪਾਲਾ ॥੨॥ اس میٹھی آواز کو سن کر گوپال بھی عاشق ہو جاتا ہے۔ 2۔
ਤਹ ਸਹਜ ਅਖਾਰੇ ਅਨੇਕ ਅਨੰਤਾ ॥ وہاں مختلف قسموں کی خوشیاں اور ابدی سکون کے ٹھکانے ہیں۔
ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਕੇ ਸੰਗੀ ਸੰਤਾ ॥੩॥ وہاں پربرہما رب کے ساتھی، سادھو رہتے ہیں۔ 3۔
ਹਰਖ ਅਨੰਤ ਸੋਗ ਨਹੀ ਬੀਆ ॥ وہاں ابدی خوشی ہے اور دکھ یعنی دوغلاپن نہیں ہے۔
ਸੋ ਘਰੁ ਗੁਰਿ ਨਾਨਕ ਕਉ ਦੀਆ ॥੪॥੩੫॥੧੦੪॥ وہ گھر گرو نے نانک کو عطا کیا ہے۔ 4۔ 35۔ 104۔
ਗਉੜੀ ਮਃ ੫ ॥ گؤڑی ما: 5۔
ਕਵਨ ਰੂਪੁ ਤੇਰਾ ਆਰਾਧਉ ॥ اے رب ! تیری تو لاتعداد شکلیں ہیں۔ اس لیے تیری وہ کون سی شکل ہے جس کی میں عبادت کروں۔
ਕਵਨ ਜੋਗ ਕਾਇਆ ਲੇ ਸਾਧਉ ॥੧॥ اے واہےگرو ! مجاہدہ کا وہ کون سا ذریعہ ہے جس کے ذریعے میں اپنے جسم کو قابو میں کروں؟ 1۔
error: Content is protected !!
Scroll to Top
https://ijwem.ulm.ac.id/pages/demo/ slot gacor https://andong-butuh.purworejokab.go.id/resources/demo/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/assets/files/demo/ https://bppkad.mamberamorayakab.go.id/wp-content/modemo/ http://mesin-dev.ft.unesa.ac.id/mesin/demo-slot/ http://gsgs.lingkungan.ft.unand.ac.id/includes/demo/ https://kemahasiswaan.unand.ac.id/plugins/actionlog/
https://jackpot-1131.com/ https://mainjp1131.com/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/template-surat/kk/kaka-sbobet/
https://ijwem.ulm.ac.id/pages/demo/ slot gacor https://andong-butuh.purworejokab.go.id/resources/demo/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/assets/files/demo/ https://bppkad.mamberamorayakab.go.id/wp-content/modemo/ http://mesin-dev.ft.unesa.ac.id/mesin/demo-slot/ http://gsgs.lingkungan.ft.unand.ac.id/includes/demo/ https://kemahasiswaan.unand.ac.id/plugins/actionlog/
https://jackpot-1131.com/ https://mainjp1131.com/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/template-surat/kk/kaka-sbobet/