Urdu-Page-18

ਕੇਤੀਆ ਤੇਰੀਆ ਕੁਦਰਤੀ ਕੇਵਡ ਤੇਰੀ ਦਾਤਿ ॥
kaytee-aa tayree-aa kudratee kayvad tayree daat.
You have so many Creative Powers, Lord; Your Bountiful Blessings are so Great.
کیتیِیا تیریِیا کُدرتیِ کیۄڈ تیریِ داتِ
وات ۔ تحفہ ۔
اے خدا تو بیشمار برکتوں اور طاقتوں کا مالک ہے ۔اور بیشمار تریاں بخششاں ہیں

ਕੇਤੇ ਤੇਰੇ ਜੀਅ ਜੰਤ ਸਿਫਤਿ ਕਰਹਿ ਦਿਨੁ ਰਾਤਿ ॥
kaytay tayray jee-a jant sifat karahi din raat.
So many of Your beings and creatures praise You day and night.
کیتے تیرے جیِء جنّت سِپھتِ کرہِ دِنُ راتِ
اور بیشمار جانداردن رات تیری صفت صلاح کر رہے ہیں ۔

ਕੇਤੇ ਤੇਰੇ ਰੂਪ ਰੰਗ ਕੇਤੇ ਜਾਤਿ ਅਜਾਤਿ ॥੩॥
kaytay tayray roop rang kaytay jaat ajaat. ||3||
You have so many forms and colors, so many classes, high and low. ||3||
کیتے تیرے روُپ رنّگ کیتے جاتِ اجاتِ
جات اجات ۔ اونچے درجے کا خاندان اُور کمینہ خاندان۔
اور کتنے ہی تیرے شکلی و صورت ہیں ۔اور کتنے ہی بلند اور کمینے خاندان ہیں ۔جو تیرے پیدا کیے ہوئے ہیں ۔

ਸਚੁ ਮਿਲੈ ਸਚੁ ਊਪਜੈ ਸਚ ਮਹਿ ਸਾਚਿ ਸਮਾਇ ॥
sach milai sach oopjai sach meh saach samaa-ay.
Meeting the True One, Truth wells up. The truthful are absorbed into the True Lord.
سچُ مِلےَ سچُ اوُپجےَ سچ مہِ ساچِ سماءِ
ساچ۔ سچ ۔
خدا وند کریم ۔ اللہ تعالیٰ خود سچا ہے ۔اس سے ملاپ سچ اپنانے سے ہی ہو سکتا ہے۔ سچ اور سچا ہی سچ میں یکسو ہو سکتا ہے ۔

ਸੁਰਤਿ ਹੋਵੈ ਪਤਿ ਊਗਵੈ ਗੁਰਬਚਨੀ ਭਉ ਖਾਇ ॥
surat hovai pat oogvai gurbachnee bha-o khaa-ay.
Intuitive understanding is obtained and one is welcomed with honor, through the Guru’s Word, filled with the Fear of God.
سُرتِ ہوۄےَ پتِ اوُگۄےَ گُربچنیِ بھءُ کھاءِ
سمجھے ۔ ہو ش و دانش سے عزت ملتی ہے ۔کلام مر شد سے خوف مٹتا ہے

ਨਾਨਕ ਸਚਾ ਪਾਤਿਸਾਹੁ ਆਪੇ ਲਏ ਮਿਲਾਇ ॥੪॥੧੦॥
naanak sachaa paatisaahu aapay la-ay milaa-ay. ||4||10||
O Nanak, the True King absorbs us into Himself. ||4||10||
نانک سچا پاتِساہُ آپے لۓ مِلاءِ
اےنانک سَچا خدا جو حکمران عالم ہے خود اُنے ساتھ ملا لیتا ہے

ਸਿਰੀਰਾਗੁ ਮਹਲਾ ੧ ॥
sireeraag mehlaa 1.
Siree Raag, First Mehl:
سِریِراگُ مہلا
ਭਲੀ ਸਰੀ ਜਿ ਉਬਰੀ ਹਉਮੈ ਮੁਈ ਘਰਾਹੁ ॥
bhalee saree je ubree ha-umai mu-ee gharaahu.
It all worked out-I was saved, and the egotism within my heart was subdued.
بھلیِ سریِ جِ اُبریِ ہئُمےَ مُئیِ گھراہُ
بھلی ۔ نکی ۔سری ۔ ہوئی ۔اُبھری۔ بچی۔ گھر ا ہو ۔ دل میں سے ۔
اچھا ہوا جو میری میں اور خودی مٹی دل سے ۔

ਦੂਤ ਲਗੇ ਫਿਰਿ ਚਾਕਰੀ ਸਤਿਗੁਰ ਕਾ ਵੇਸਾਹੁ ॥
doot lagay fir chaakree satgur kaa vaysaahu.
The evil energies have been made to serve me, since I placed my faith in the True Guru.
دوُت لگے پھِرِ چاکریِ ستِگُر کا ۄیساہُ
دوت۔ وکار ۔ دشمن ۔ویسا ہو ۔ بھرؤسا ۔
سچے مر شد پر ایمان لانیے دُشمن خادم ہو گئے اور دلی تشویش چھوڑی جھگڑا مٹا ۔

ਕਲਪ ਤਿਆਗੀ ਬਾਦਿ ਹੈ ਸਚਾ ਵੇਪਰਵਾਹੁ ॥੧॥
kalap ti-aagee baad hai sachaa vayparvaahu. ||1||
I have renounced my useless schemes, by the Grace of the True, Carefree Lord. ||1||
کلپ تِیاگیِ بادِ ہےَ سچا ۄیپرۄاہُ
کلپ ۔ کالیش باد ۔ جھگڑا ۔
الہٰی ملاپ حاصل ہوا اے من سچ کے ملاپ سے خوف مٹتا ہے ۔

ਮਨ ਰੇ ਸਚੁ ਮਿਲੈ ਭਉ ਜਾਇ ॥
man ray sach milai bha-o jaa-ay.
O mind, meeting with the True One, fear departs.
من رے سچُ مِلےَ بھءُ جاءِ
الہٰی خوف کے بغیر دنیاوی خؤف نہیں مٹتا ۔اور بیخوفی نہیں ہوتی ۔

ਭੈ ਬਿਨੁ ਨਿਰਭਉ ਕਿਉ ਥੀਐ ਗੁਰਮੁਖਿ ਸਬਦਿ ਸਮਾਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
bhai bin nirbha-o ki-o thee-ai gurmukh sabad samaa-ay. ||1|| rahaa-o.
Without the Fear of God, how can anyone become fearless? Become Gurmukh, and immerse yourself in the Shabad. ||1||Pause||
بھےَ بِنُ نِربھءُ کِءُ تھیِئےَ گُرمُکھِ سبدِ سماءِ رہاءُ
گورمکھ ۔ مرید مرشد ۔ شبد۔ کلام ۔
ایسا کلام مرشد اپنانے سے ہوتا ہے ۔

ਕੇਤਾ ਆਖਣੁ ਆਖੀਐ ਆਖਣਿ ਤੋਟਿ ਨ ਹੋਇ ॥
kaytaa aakhan aakhee-ai aakhan tot na ho-ay.
How can we describe Him with words? There is no end to the descriptions of Him.
کیتا آکھنھُ آکھیِئےَ آکھنھِ توٹِ ن ہوءِ
کیتا آکھن آکھیئے ۔ آکھن توٹ نہ ہوئے ۔ ضرب المثل ۔ کہاوتیں تو اتنی ہیں کہنے میں۔ کہنے میں کوئی کمی نہیں ۔
کتنی کہانیاں کیوں نہ بیان گریں کہنے سے کوئی کمی واقع نہیں ہوتی ۔

ਮੰਗਣ ਵਾਲੇ ਕੇਤੜੇ ਦਾਤਾ ਏਕੋ ਸੋਇ ॥
mangan vaalay kayt-rhay daataa ayko so-ay.
There are so many beggars, but He is the only Giver.
منّگنھ ۄالے کیتڑے داتا ایکو سوءِ
مانگیں مانگنے والے تو بیشمار ہیں اور دینے والا خداواحد ہے ۔

ਜਿਸ ਕੇ ਜੀਅ ਪਰਾਣ ਹੈ ਮਨਿ ਵਸਿਐ ਸੁਖੁ ਹੋਇ ॥੨॥
jis kay jee-a paraan hai man vasi-ai sukh ho-ay. ||2||
He is the Giver of the soul, and the praanaa, the breath of life; when He dwells within the mind, there is peace. ||2||
جِس کے جیِء پرانھ ہےَ منِ ۄسِئےَ سُکھُ ہوءِ
جس خدا نے ہمیں زندگی عنایت فرمائی ہے اگر وہ انسان کے دل میں بسے تبھی سکھ ملتا ہے ۔

ਜਗੁ ਸੁਪਨਾ ਬਾਜੀ ਬਨੀ ਖਿਨ ਮਹਿ ਖੇਲੁ ਖੇਲਾਇ ॥
jag supnaa baajee banee khin meh khayl khaylaa-ay.
The world is a drama, staged in a dream. In a moment, the play is played out.
جگُ سُپنا باجیِ بنیِ کھِن مہِ کھیلُ کھیلاءِ
باجی ۔ کھیل ۔پرسنتا۔ خوشی
یہ عالم ایک خواب ہے اور ایک کھیل ہے۔ اور انسان کھیل کھیل چلا جاتا ہے

ਸੰਜੋਗੀ ਮਿਲਿ ਏਕਸੇ ਵਿਜੋਗੀ ਉਠਿ ਜਾਇ ॥
sanjogee mil ayksay vijogee uth jaa-ay.
Some attain union with the Lord, while others depart in separation.
سنّجوگیِ مِلِ ایکسے ۄِجوگیِ اُٹھِ جاءِ
قدرتی ۔ طور پر انسان اکھٹے ہوتے ہیں اور جدا ہوکر چلے جاتے ہیں

ਜੋ ਤਿਸੁ ਭਾਣਾ ਸੋ ਥੀਐ ਅਵਰੁ ਨ ਕਰਣਾ ਜਾਇ ॥੩॥
jo tis bhaanaa so thee-ai avar na karnaa jaa-ay. ||3||
Whatever pleases Him comes to pass; nothing else can be done. ||3||
جو تِسُ بھانھا سو تھیِئےَ اۄرُ ن کرنھا جاءِ
جو خدا اچھا سمجھتا ہے وہی ہوتا ہے اور کسی اور کی کچھ کرنیکی کوئی طاقت نہیں۔

ਗੁਰਮੁਖਿ ਵਸਤੁ ਵੇਸਾਹੀਐ ਸਚੁ ਵਖਰੁ ਸਚੁ ਰਾਸਿ ॥
gurmukh vasat vaysaahee-ai sach vakhar sach raas.
The Gurmukhs purchase the Genuine Article. The True Merchandise is purchased with the True Capital.
گُرمُکھِ ۄستُ ۄیساہیِئےَ سچُ ۄکھرُ سچُ راسِ
اسلئے مرشد کے وسیلے سے نام ہی خریدنا چاہیے۔ سچا سوداہی سچی دولت ہے ۔

ਜਿਨੀ ਸਚੁ ਵਣੰਜਿਆ ਗੁਰ ਪੂਰੇ ਸਾਬਾਸਿ ॥
jinee sach vananji-aa gur pooray saabaas.
Those who purchase this True Merchandise through the Perfect Guru are blessed.
جِنیِ سچُ ۄنھنّجِیا گُر پوُرے ساباسِ
جنہوں نے سچ خریدا ہے اُس اوپر الہٰی و مرشد کی شفقت و عنایت ہے ۔

ਨਾਨਕ ਵਸਤੁ ਪਛਾਣਸੀ ਸਚੁ ਸਉਦਾ ਜਿਸੁ ਪਾਸਿ ॥੪॥੧੧॥
naanak vasat pachhaansee sach sa-udaa jis paas. ||4||11||
O Nanak, one who stocks this True Merchandise shall recognize and realize the Genuine Article. ||4||11||
نانک ۄستُ پچھانھسیِ سچُ سئُدا جِسُ پاسِ
۔ پچھانسی۔ پچھانتا ہے ۔ پہچانتا
اَے نانک جسکے پاس یہ سَچا سودا ہے اُسکی قدر و قیمت وہی جانتا ہے ۔

ਸਿਰੀਰਾਗੁ ਮਹਲੁ ੧ ॥
sireeraag mahal 1.
Siree Raag, First Mehl:
سِریِراگُ مہلُ
ਧਾਤੁ ਮਿਲੈ ਫੁਨਿ ਧਾਤੁ ਕਉ ਸਿਫਤੀ ਸਿਫਤਿ ਸਮਾਇ ॥
Dhaat milai fun Dhaat ka-o siftee sifat samaa-ay.
As metal merges with metal, those who chant the Praises of the Lord are absorbed into the Praiseworthy Lord.
دھاتُ مِلےَ پھُنِ دھاتُ کءُ سِپھتیِ سِپھتِ سماءِ
جیسے دھات میں دھات مل کر اُسمیں کوئی تفاوت اور فرق مٹ جاتا ہے۔ جیسے ہی الہٰی صٖت صلاح سے انسان خدا میں یکسو ہو جاتا ہے

ਲਾਲੁ ਗੁਲਾਲੁ ਗਹਬਰਾ ਸਚਾ ਰੰਗੁ ਚੜਾਉ ॥
laal gulaal gahbaraa sachaa rang charhaa-o.
Like the poppies, they are dyed in the deep crimson color of Truthfulness.
لالُ گُلالُ گہبرا سچا رنّگُ چڑاءُ
گلال شوخ گلال رنگ کا پھول کہبرا۔ شوخ
جیسے دھات میں دھات۔ اسطرح الہٰی صٖت صلاح سے انسان گل لالہ کے رنگ کی مانند سرخرود ہو جاتا ہے

ਸਚੁ ਮਿਲੈ ਸੰਤੋਖੀਆ ਹਰਿ ਜਪਿ ਏਕੈ ਭਾਇ ॥੧॥
sach milai santokhee-aa har jap aykai bhaa-ay. ||1||
Those contented souls who meditate on the Lord with single-minded love, meet the True Lord. ||1||
سچُ مِلےَ سنّتوکھیِیا ہرِ جپِ ایکےَ بھاءِ
سنتو کھیا ۔ صابر
مگر وہ سچ مراد سچا خدا اُن صابروں کو ملتا ہے جو ہمیشہ صبر والی زندگی بتانے والوں کو ملتا ہے

ਭਾਈ ਰੇ ਸੰਤ ਜਨਾ ਕੀ ਰੇਣੁ ॥
bhaa-ee ray sant janaa kee rayn.
O Siblings of Destiny, become the dust of the feet of the humble Saints.
بھائیِ رے سنّت جنا کیِ رینھُ
جو الہٰی عبادت ور یاض میں محو اُس واحد خدا میں محو رہتے ہیں۔ اے بھائی سنتوں کی دھول ہو جا۔

ਸੰਤ ਸਭਾ ਗੁਰੁ ਪਾਈਐ ਮੁਕਤਿ ਪਦਾਰਥੁ ਧੇਣੁ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
sant sabhaa gur paa-ee-ai mukat padaarath Dhayn. ||1|| rahaa-o.
In the Society of the Saints, the Guru is found. He is the Treasure of Liberation, the Source of all good fortune. ||1||Pause||
سنّت سبھا گُرُ پائیِئےَ مُکتِ پدارتھُ دھینھُ رہاءُ
دھین ۔ گائے
سنتوں کی صحبت و قربت میں مرشد ملتا ہے ۔نجات کا تحفہ ملتا ہے

ਊਚਉ ਥਾਨੁ ਸੁਹਾਵਣਾ ਊਪਰਿ ਮਹਲੁ ਮੁਰਾਰਿ ॥
oocha-o thaan suhaavanaa oopar mahal muraar.
Upon that Highest Plane of Sublime Beauty, stands the Mansion of the Lord.
اوُچءُ تھانُ سُہاۄنھا اوُپرِ مہلُ مُرارِ
خدا اُس اونچے خوبصورت محل پر خدا کا ٹھکانہ ہے

ਸਚੁ ਕਰਣੀ ਦੇ ਪਾਈਐ ਦਰੁ ਘਰੁ ਮਹਲੁ ਪਿਆਰਿ ॥
sach karnee day paa-ee-ai dar ghar mahal pi-aar.
By true actions, this human body is obtained, and the door within ourselves which leads to the Mansion of the Beloved, is found.
سچُ کرنھیِ دے پائیِئےَ درُ گھرُ مہلُ پِیارِ
سچے اخلاق و عمل سے اور محبت ۔ پریم پیار سے اسکے محل وٹھکانے کا پتہ چلتا ہے ۔

ਗੁਰਮੁਖਿ ਮਨੁ ਸਮਝਾਈਐ ਆਤਮ ਰਾਮੁ ਬੀਚਾਰਿ ॥੨॥
gurmukh man samjaa-ee-ai aatam raam beechaar. ||2||
The Gurmukhs train their minds to contemplate the Lord, the Supreme Soul. ||2||
گُرمُکھِ منُ سمجھائیِئےَ آتم رامُ بیِچارِ
مرشد کے وسیلے سے ذہن اور من کو سمجہانیے اور سنجیدگی اور مستقل مزاجی سے اور روحانی سمجھ اور خیالات سے

ਤ੍ਰਿਬਿਧਿ ਕਰਮ ਕਮਾਈਅਹਿ ਆਸ ਅੰਦੇਸਾ ਹੋਇ ॥
taribaDh karam kamaa-ee-ahi aas andaysaa ho-ay.
By actions committed under the influence of the three qualities, hope and anxiety are produced.
ت٘رِبِدھِ کرم کمائیِئہِ آس انّدیسا ہوءِ
تربدھ ۔ تین طریقوں سے ۔مراد رجو ۔ حکمرانی
۔دنیا کے کام تین طریقوں اور اوصاف کے تحت کام کیئے جاتے ہیں ( رجو۔ تمو۔ ستو) جس ے امیدیں اور نا اُمیدی اور تشویش بنتی رہتی ہے ۔

ਕਿਉ ਗੁਰ ਬਿਨੁ ਤ੍ਰਿਕੁਟੀ ਛੁਟਸੀ ਸਹਜਿ ਮਿਲਿਐ ਸੁਖੁ ਹੋਇ ॥
ki-o gur bin tarikutee chhutsee sahj mili-ai sukh ho-ay.
Without the Guru, how can anyone be released from these three qualities? Through intuitive wisdom, we meet with Him and find peace.
کِءُ گُر بِنُ ت٘رِکُٹیِ چھُٹسیِ سہجِ مِلِئےَ سُکھُ ہوءِ
یہ تشویش اور ترکٹی یا بتوڑی مرشد کی پناہ کے بغیر کسے نجات حاصل ہوگی ( پر سکون اور مستقل مزاجی سے استقلال پاکر تب آسائش مل سکتی ہے ۔

ਨਿਜ ਘਰਿ ਮਹਲੁ ਪਛਾਣੀਐ ਨਦਰਿ ਕਰੇ ਮਲੁ ਧੋਇ ॥੩॥
nij ghar mahal pachhaanee-ai nadar karay mal Dho-ay. ||3||
Within the home of the self, the Mansion of His Presence is realized when He bestows His Glance of Grace and washes away our pollution. ||3||
نِج گھرِ مہلُ پچھانھیِئےَ ندرِ کرے ملُ دھوءِ
جب آپ کو اپنی خویش پہچان ہو جائیگی کہ میں کیسا ہوں اور نگاہے شفقت سے اپنی ناپاکزگی دور کرکے ۔

ਬਿਨੁ ਗੁਰ ਮੈਲੁ ਨ ਉਤਰੈ ਬਿਨੁ ਹਰਿ ਕਿਉ ਘਰ ਵਾਸੁ ॥
bin gur mail na utrai bin har ki-o ghar vaas.
Without the Guru, this pollution is not removed. Without the Lord, how can there be any homecoming?
بِنُ گُر میَلُ ن اُترےَ بِنُ ہرِ کِءُ گھر ۄاسُ
مرشد کے بغیر یہ ناپاکیزگی دور نہیں ہوتی نہ ہی خود شناسی ہو سکتی ہے

ਏਕੋ ਸਬਦੁ ਵੀਚਾਰੀਐ ਅਵਰ ਤਿਆਗੈ ਆਸ ॥
ayko sabad veechaaree-ai avar ti-aagai aas.
Contemplate the One Word of the Shabad, and abandon other hopes.
ایکو سبدُ ۄیِچاریِئےَ اۄر تِیاگےَ آس
صرف مرشد کے سبق و کلام و خدا پر اعتماد اور عبادت ہی واحد ذریعہ ہے

ਨਾਨਕ ਦੇਖਿ ਦਿਖਾਈਐ ਹਉ ਸਦ ਬਲਿਹਾਰੈ ਜਾਸੁ ॥੪॥੧੨॥
naanak daykh dikhaa-ee-ai ha-o sad balihaarai jaas. ||4||12||
O Nanak, I am forever a sacrifice to the one who beholds, and inspires others to behold Him. ||4||12||
نانک دیکھِ دِکھائیِئےَ ہءُ سد بلِہارےَ جاسُ
اور تمام اُمنگیں اور بھروسے چھوڑ کر اے نانک جو مرشد خود دیدار پاکر مجھے دیدار کرتا ہے میں اُسپر قربان ہوں

ਸਿਰੀਰਾਗੁ ਮਹਲਾ ੧ ॥
sireeraag mehlaa 1.
Siree Raag, First Mehl:
سِریِراگُ مہلا ੧॥
ਧ੍ਰਿਗੁ ਜੀਵਣੁ ਦੋਹਾਗਣੀ ਮੁਠੀ ਦੂਜੈ ਭਾਇ ॥
Dharig jeevan duhaaganee muthee doojai bhaa-ay.
The life of the discarded bride is cursed. She is deceived by the love of duality.
دھ٘رِگُ جیِۄنھُ دوہاگنھیِ مُٹھیِ دوُجےَ بھاءِ ॥
دھرگ ۔ لعنت ۔دوہاگنی ۔ دو خاوندوں والی ۔بد قسمت۔ مُٹھی۔ دہوکا کھائی۔ ڈوبے بھائے دویش دولت
جو انسان دو راستوں پر چلتا ہے وہ دو سرے دویش اور دوئی میں دھوکا میں لٹ گیا ۔

ਕਲਰ ਕੇਰੀ ਕੰਧ ਜਿਉ ਅਹਿਨਿਸਿ ਕਿਰਿ ਢਹਿ ਪਾਇ ॥
kalar kayree kanDh ji-o ahinis kir dheh paa-ay.
Like a wall of sand, day and night, she crumbles, and eventually, she breaks down altogether.
کلر کیریِ کنّدھ جِءُ اہِنِسِ کِرِ ڈھہِ پاءِ ॥
ایہہ ۔ دن ۔ نس ۔ رات اہنس شب و روز
وہ ایسے ہے جیسے کلر اٹھی دیوار روز و شب آہستہ آہستہ ۔ بتدریج ختم ہوتی رہتی ہے ۔

ਬਿਨੁ ਸਬਦੈ ਸੁਖੁ ਨਾ ਥੀਐ ਪਿਰ ਬਿਨੁ ਦੂਖੁ ਨ ਜਾਇ ॥੧॥
bin sabdai sukh naa thee-ai pir bin dookh na jaa-ay. ||1||
Without the Word of the Shabad, peace does not come. Without her Husband Lord, her suffering does not end. ||1||
بِنُ سبدےَ سُکھُ نا تھیِئےَ پِر بِنُ دوُکھُ ن جاءِ ॥੧॥
کلام کے بغیر سکھ نہیں مل سکتا اور خدا کے بغیر عذاب نہیں مٹتا ۔

ਮੁੰਧੇ ਪਿਰ ਬਿਨੁ ਕਿਆ ਸੀਗਾਰੁ ॥
munDhay pir bin ki-aa seegaar.
O soul-bride, without your Husband Lord, what good are your decorations?
مُنّدھے پِر بِنُ کِیا سیِگارُ ॥
مندھے ۔ جاہل ۔
اے جاہل (پتی) یعنی خدا کے بغیر سجاوٹ کرنا بیفائدہ ہے ۔