Urdu-Page-163

ਆਪੇ ਹੀ ਪ੍ਰਭੁ ਦੇਹਿ ਮਤਿ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਧਿਆਈਐ 
aapay hee parabh deh mat har naam Dhi-aa-ee-ai.
O’ God, upon whom You bestow wisdom meditates on Naam.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂ!, ਜਿਸ ਜੀਵ ਨੂੰ ਤੂੰ ਆਪ ਹੀ ਮਤਿ ਦੇਂਦਾ ਹੈਂਉਸੇ ਪਾਸੋਂ ਹਰਿਨਾਮ ਸਿਮਰਿਆ ਜਾ ਸਕਦਾ ਹੈ
آپے ہی پ٘ربھُ دیہِ متِ ہرِ نامُ دھِیائیِۓَ 
اے خدا ، جس پر تو حکمت عطا کرتا ہے وہ نام پر غور کرتا ہے

ਵਡਭਾਗੀ ਸਤਿਗੁਰੁ ਮਿਲੈ ਮੁਖਿ ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਪਾਈਐ 
vadbhaagee satgur milai mukh amrit paa-ee-ai.
By good fortune, one who meets the true Guru, tastes the nectar of Naam.
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਵੱਡੇ ਭਾਗਾਂ ਨਾਲ ਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪੈਂਦਾ ਹੈਉਸ ਦੇ ਮੂੰਹ ਵਿਚ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਨਾਮਰਸ ਪੈਂਦਾ ਹੈ 
وڈبھاگی ستِگُرُ مِلےَ مُکھِ انّم٘رِتُ پائیِۓَ 
خوش قسمت ، جو سچے گرو سے ملتا ہے ، اسے نام کے امرت کا ذائقہ حاصل ہوتا ہے۔

ਹਉਮੈ ਦੁਬਿਧਾ ਬਿਨਸਿ ਜਾਇ ਸਹਜੇ ਸੁਖਿ ਸਮਾਈਐ 
 ha-umai dubiDhaa binas jaa-ay sehjay sukh samaa-ee-ai.
His egotism and duality are eradicated and he intuitively remains in bliss.
ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਅੰਦਰੋਂ ਦੁਚਿੱਤਾਪਨ ਅਤੇ ਹਉਮੈ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈਉਹ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਵਿਚ ਟਿਕਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ l 
ہئُمےَ دُبِدھا بِنسِ جاءِ سہجے سُکھِ سمائیِۓَ 
اس کی عداوت اور دوائی مٹ جاتی ہے اور وہ بدیہی طور پر خوشی میں رہتا ہے

ਸਭੁ ਆਪੇ ਆਪਿ ਵਰਤਦਾ ਆਪੇ ਨਾਇ ਲਾਈਐ 
 sabh aapay aap varatdaa aapay naa-ay laa-ee-ai. ||2||
He Himself is All-pervading; He Himself links us to Naam. ||2||
ਹਰ ਥਾਂ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਆਪ ਮੌਜੂਦ ਹੈਉਹ ਆਪ ਹੀ (ਜੀਵਾਂ ਨੂੰਆਪਣੇ ਨਾਮ ਵਿਚ ਜੋੜਦਾ ਹੈ  
سبھُ آپے آپِ ورتدا آپے ناءِ لائیِۓَ 2
وہ خود ہی ہر طرف پھیل رہا ہے۔ وہ خود ہمیں نام سے جوڑتا ہے

ਮਨਮੁਖਿ ਗਰਬਿ  ਪਾਇਓ ਅਗਿਆਨ ਇਆਣੇ 
 manmukh garab na paa-i-o agi-aan i-aanay.
The self-willed persons in their arrogant pride do not realize God; they are ignorant and foolish.
ਆਪਣੇ ਮਨ ਦੇ ਪਿੱਛੇ ਤੁਰਨ ਵਾਲੇ ਮਨੁੱਖ ਹੰਕਾਰ ਕਾਰਨਵਾਹਿਗੁਰੂ ਨੂੰ ਪ੍ਰਾਪਤ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦੇਉਹ ਬੇਸਮਝ ਤੇ ਨਾਦਾਨ ਹਨ
منمُکھِ گربِ ن پائِئۄ اگِیان اِیاݨے 
مغرور غرور والے اپنے مغرور فخر میں خدا کو نہیں پہچانتے۔ وہ جاہل اور بے وقوف ہیں

ਸਤਿਗੁਰ ਸੇਵਾ ਨਾ ਕਰਹਿ ਫਿਰਿ ਫਿਰਿ ਪਛੁਤਾਣੇ 
satgur sayvaa naa karahi fir fir pachhutaanay.
They do not follow the teachings of the True Guru, and in the end, they regret and repent over and over again.
ਉਹ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਨਹੀਂ ਪੈਂਦੇ ਅਤੇ ਮੁੜ ਮੁੜ ਪਛੁਤਾਂਦੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ
ستِگُر سیوا نا کرہِ پھِرِ پھِرِ پچھُتاݨے 
وہ سچے گرو کی تعلیمات پر عمل نہیں کرتے ہیں ، اور آخر میں ، بار بار پچھتاتے ہیں اور توبہ کرتے ہیں۔

ਗਰਭ ਜੋਨੀ ਵਾਸੁ ਪਾਇਦੇ ਗਰਭੇ ਗਲਿ ਜਾਣੇ 
garabh jonee vaas paa-iday garbhay gal jaanay.
They are stuck in the cycles of births and deaths and ultimately they spiritually rot in these rounds of birth and death.
ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਜਨਮ ਮਰਨ ਦੇ ਗੇੜ ਵਿਚ ਪਏ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨਇਸ ਗੇੜ ਵਿਚ ਉਹਨਾਂ ਦਾ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਗਲ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
گربھ جۄنی واسُ پائِدے گربھے گلِ جاݨے 
وہ پیدائش اور اموات کے چکروں میں پھنس چکے ہیں اور بالآخر وہ روحانی طور پر پیدائش اور موت کے ان چکروں میں گھوم جاتے ہیں

ਮੇਰੇ ਕਰਤੇ ਏਵੈ ਭਾਵਦਾ ਮਨਮੁਖ ਭਰਮਾਣੇ 
mayray kartay ayvai bhaavdaa manmukh bharmaanay. ||3||
It so pleases my Creator that these self-willed may remain lost in doubt. ||3||
ਮੇਰੇ ਕਰਤਾਰ ਨੂੰ ਇਹੀ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ ਕਿ ਆਪਣੇ ਮਨ ਦੇ ਪਿੱਛੇ ਤੁਰਨ ਵਾਲੇ ਮਨੁੱਖ ਜਨਮ ਮਰਨ ਵਿਚ ਹੀ ਭਟਕਦੇ ਰਹਿਣ 
میرے کرتے ایوےَ بھاودا منمُکھ بھرماݨے 2
یہ میرے خالق کو اتنا خوش کرتا ہے کہ یہ خود غرض شک میں پھنس سکتے ہیں

ਮੇਰੈ ਹਰਿ ਪ੍ਰਭਿ ਲੇਖੁ ਲਿਖਾਇਆ ਧੁਰਿ ਮਸਤਕਿ ਪੂਰਾ 
mayrai har parabh laykh likhaa-i-aa Dhur mastak pooraa.
One who was preordained with perfect destiny by my perfect God,
ਜਿਸ ਵਡਭਾਗੀ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਮੱਥੇ ਉਤੇ ਮੇਰੇ ਹਰਿਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪਣੀ ਧੁਰ ਦਰਗਾਹ ਤੋਂ ਬਖ਼ਸ਼ਸ਼ ਦਾ ਅਟੱਲ ਲੇਖ ਲਿਖ ਦਿੱਖ ਦਿੱਤਾ
میرےَ ہرِ پ٘ربھِ لیکھُ لِکھائِیا دھُرِ مستکِ پۄُرا 
ایک جو میرے کامل خدا نے کامل تقدیر کے ساتھ پیش کیا تھا

ਹਰਿ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਧਿਆਇਆ ਭੇਟਿਆ ਗੁਰੁ ਸੂਰਾ 
har har naam Dhi-aa-i-aa bhayti-aa gur sooraa.
He meets with the brave guru and always lovingly meditates on God’s Name.
ਉਸ ਨੂੰ ਸਭ ਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂ ਬਚਾਣ ਵਾਲਾ ਸੂਰਮਾ ਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪੈਂਦਾ ਹੈਅਤੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਉਹ ਸਦਾ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰਦਾ ਹੈ 
ہرِ ہرِ نامُ دھِیائِیا بھیٹِیا گُرُ سۄُرا 
وہ بہادر گرو سے ملتا ہے اور ہمیشہ محبت کے ساتھ خدا کے نام پر غور کرتا ہے

ਮੇਰਾ ਪਿਤਾ ਮਾਤਾ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਹੈ ਹਰਿ ਬੰਧਪੁ ਬੀਰਾ 
mayraa pitaa maataa har naam hai har banDhap beeraa.
Now, God’s Name is my father, mother, brother and kin.
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਹੀ ਮੇਰਾ ਪਿਉ ਹੈ ਨਾਮ ਹੀ ਮੇਰੀ ਮਾਂ ਹੈਪਰਮਾਤਮਾ (ਦਾ ਨਾਮਹੀ ਮੇਰਾ ਸਨਬੰਧੀ ਹੈ ਮੇਰਾ ਵੀਰ ਹੈ
میرا پِتا ماتا ہرِ نامُ ہےَ ہرِ بنّدھپُ بیِرا 
اب ، خدا کا نام میرے والد ، والدہ ، بھائی اور رشتہ دار ہے

ਹਰਿ ਹਰਿ ਬਖਸਿ ਮਿਲਾਇ ਪ੍ਰਭ ਜਨੁ ਨਾਨਕੁ ਕੀਰਾ ੧੭੩੭
har har bakhas milaa-ay parabh jan naanak keeraa. ||4||3||17||37||
O’ God, please bestow mercy and unite your humble devotee Nanak with Yourself. ||4||3||17||37||
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਹੇ ਹਰੀਇਹ ਨਾਨਕ ਤੇਰਾ ਨਿਮਾਣਾ ਦਾਸ ਹੈਇਸ ਉਤੇ ਬਖ਼ਸ਼ਸ਼ ਕਰ ਤੇ ਇਸ ਨੂੰ (ਆਪਣੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚਜੋੜੀ ਰੱਖ 
ہرِ ہرِ بخشِ مِلاءِ پ٘ربھ جنُ نانکُ کیِرا 43 17  37 
براہ کرم رحمت عطا کریں اور اپنے ساتھ عاجز عقیدت مند نانک کو متحد کریں

ਗਉੜੀ ਬੈਰਾਗਣਿ ਮਹਲਾ  
ga-orhee bairaagan mehlaa 3.
Raag Gauri Bairagan, Third Guru:
گئُڑی بیَراگݨِ محلا 3
ਸਤਿਗੁਰ ਤੇ ਗਿਆਨੁ ਪਾਇਆ ਹਰਿ ਤਤੁ ਬੀਚਾਰਾ 
satgur tay gi-aan paa-i-aa har tat beechaaraa.
Receiving divine knowledge from the true Guru, I contemplated over God’s virtues.
ਸੱਚੇ ਗੁਰਾਂ ਪਾਸੋਂ ਬ੍ਰਹਮ ਬੋਧ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰਕੇ ਮੈਂ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਦੇ ਗੁਣਾਂ ਨੂੰ ਸੋਚਿਆ ਸਮਝਿਆ ਹੈ 
ستِگُر تے گِیانُ پائِیا ہرِ تتُ بیِچارا 
 سچے گرو سے خدائی علم حاصل کرتے ہوئے ، میں نے خدا کی خوبیوں پر غور کیا۔

ਮਤਿ ਮਲੀਣ ਪਰਗਟੁ ਭਈ ਜਪਿ ਨਾਮੁ ਮੁਰਾਰਾ 
 mat maleen pargat bha-ee jap naam muraaraa.
By meditating on God’s Name, the intellect polluted with vices was enlightened.
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰ ਕੇ ਵਿਕਾਰਾਂ ਦੇ ਕਾਰਨ ਮੈਲੀ ਹੋਈ ਮਤਿ ਨਿਖਰ ਪਈ
متِ ملیِݨ پرگٹُ بھئی جپِ نامُ مُرارا 
خدا کے نام پر غور کرنے سے ، برائیوں سے آلودہ ہونے والی عقل روشن ہوگئی۔

ਸਿਵਿ ਸਕਤਿ ਮਿਟਾਈਆ ਚੂਕਾ ਅੰਧਿਆਰਾ 
 siv sakat mitaa-ee-aa chookaa anDhi-aaraa.
God erased the influence of Maya and the darkness of ignorance.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਨੇ ਮਾਇਆ ਦਾ ਪ੍ਰਭਾਵ ਮਿਟਾ ਦਿੱਤਾਅਤੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਦਾ ਹਨੇਰਾ ਦੂਰ ਹੋ ਗਿਆ
سِوِ سکتِ مِٹائیِیا چۄُکا انّدھِیارا 
خدا نے مایا کے اثر و رسوخ اور جہالت کے اندھیرے کو مٹا دیا

ਧੁਰਿ ਮਸਤਕਿ ਜਿਨ ਕਉ ਲਿਖਿਆ ਤਿਨ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਪਿਆਰਾ 
Dhur mastak jin ka-o likhi-aa tin har naam pi-aaraa. ||1||
God’s Name is pleasing only to those, who have been so preordained . ||1||
 ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਹੀ ਪਿਆਰਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈਜਿਨ੍ਹਾਂ ਦੇ ਮੱਥੇ ਉਤੇ ਧੁਰੋਂ ਇਹੋ ਜਿਹਾ ਲਿਖਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ 
دھُرِ مستکِ جِن کءُ لِکھِیا تِن ہرِ نامُ پِیارا 1
خدا کا نام صرف ان لوگوں کو ہی خوش لگتا ہے ، جن کو اس سے پہلے سے تیار کیا گیا ہے

ਹਰਿ ਕਿਤੁ ਬਿਧਿ ਪਾਈਐ ਸੰਤ ਜਨਹੁ ਜਿਸੁ ਦੇਖਿ ਹਉ ਜੀਵਾ 
har kit biDh paa-ee-ai sant janhu jis daykh ha-o jeevaa.
O’ Saints, please tell me how can I realize God, beholding whom I spiritually survive.
ਹੇ ਸੰਤ ਜਨੋ!ਜਿਸ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਵੇਖ ਕੇ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਪੈਦਾ ਹੁੰਦਾ ਹੈ ਦੱਸੋ ਉਸ ਨੂੰ ਕਿਸ ਤਰੀਕੇ ਨਾਲ ਮਿਲਿਆ ਜਾ ਸਕਦਾ ਹੈ
ہرِ کِتُ بِدھِ پائیِۓَ سنّت جنہُ جِسُ دیکھِ ہءُ جیِوا 
براہ کرم مجھے بتائیں کہ میں خدا کا احساس کیسے کرسکتا ہوں ، جس کو دیکھ کر میں روحانی طور پر زندہ ہوں۔

ਹਰਿ ਬਿਨੁ ਚਸਾ  ਜੀਵਤੀ ਗੁਰ ਮੇਲਿਹੁ ਹਰਿ ਰਸੁ ਪੀਵਾ  ਰਹਾਉ 
har bin chasaa na jeevtee gur maylihu har ras peevaa. ||1|| rahaa-o.
Without God, I cannot spiritually survive even for an instant. Please unite me with the Guru, so that I may partake the elixir of God’s Name. ||1||Pause||
ਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਵਿੱਛੁੜ ਕੇ ਮੈਂ ਰਤਾ ਭਰ ਸਮੇ ਲਈ ਭੀ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਜੀਊਂ ਨਹੀਂ ਸਕਦੀ ਹੇ ਸੰਤ ਜਨੋਮੈਨੂੰ ਗੁਰੂ ਨਾਲ ਮਿਲਾਵੋ ਤਾਂ ਜੁ ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮੈਂ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਰਸ ਪੀ ਸਕਾਂ l
ہرِ بِنُ چسا ن جیِوتی گُر میلِہُ ہرِ رسُ پیِوا 1 رہاءُ 
خدا کے بغیر ، میں روحانی طور پر ایک لمحہ کے لئے بھی زندہ نہیں رہ سکتا

ਹਉ ਹਰਿ ਗੁਣ ਗਾਵਾ ਨਿਤ ਹਰਿ ਸੁਣੀ ਹਰਿ ਹਰਿ ਗਤਿ ਕੀਨੀ 
ha-o har gun gaavaa nit har sunee har har gat keenee.
I listen and sing the Praises of God daily; God has emancipated me.
ਮੈਂ ਨਿੱਤ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣ ਗਾਂਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹਾਂਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਸੁਣਦਾ ਰਹਿੰਦਾ ਹਾਂਉਸ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਮੈਨੂੰ ਉੱਚੀ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਬਖ਼ਸ ਦਿੱਤੀ ਹੈ
ہءُ ہرِ گُݨ گاوا نِت ہرِ سُݨی ہرِ ہرِ گتِ کیِنی 
میں روزانہ خدا کی حمد سنتا ہوں اور گاتا ہوں۔ خدا نے مجھے نجات دی ہے

ਹਰਿ ਰਸੁ ਗੁਰ ਤੇ ਪਾਇਆ ਮੇਰਾ ਮਨੁ ਤਨੁ ਲੀਨੀ 
har ras gur tay paa-i-aa mayraa man tan leenee.
I have received the essence of Naam from the Guru; now my mind and body are merged therein.
ਗੁਰੂ ਪਾਸੋਂ ਮੈਂ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਸੁਆਦ ਹਾਸਲ ਕੀਤਾ ਹੈਹੁਣ ਮੇਰਾ ਮਨ ਮੇਰਾ ਤਨ ਉਸ ਸੁਆਦ ਵਿਚ ਲੀਨ ਹੋ ਗਿਆ ਹੈ 
ہرِ رسُ گُر تے پائِیا میرا منُ تنُ لیِنی 
مجھے گرو سے نام کا جوہر ملا ہے۔ اب اس میں میرا دماغ اور جسم مل گئے ہیں۔

ਧਨੁ ਧਨੁ ਗੁਰੁ ਸਤ ਪੁਰਖੁ ਹੈ ਜਿਨਿ ਭਗਤਿ ਹਰਿ ਦੀਨੀ 
 Dhan Dhan gur sat purakh hai jin bhagat har deenee.
Blessed is the Guru who has bestowed the gift of devotional worship of God.
ਉਹ ਸਤਪੁਰਖ ਗੁਰੂ ਸਦਾ ਹੀ ਸਲਾਹੁਣਯੋਗ ਹੈਜਿਸ ਨੇ (ਮੈਨੂੰਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਭਗਤੀ ਦੀ ਦਾਤਿ ਦਿੱਤੀ ਹੈ 
دھنُ دھنُ گُرُ ست پُرکھُ ہےَ جِنِ بھگتِ ہرِ دیِنی 
مبارک ہے وہ گرو جس نے خدا کی عقیدت مند عبادت کا تحفہ دیا ہے

ਜਿਸੁ ਗੁਰ ਤੇ ਹਰਿ ਪਾਇਆ ਸੋ ਗੁਰੁ ਹਮ ਕੀਨੀ 
 jis gur tay har paa-i-aa so gur ham keenee. ||2||
I have dedicated myself to such a Guru, through whom I have realized God. ||2|| 
ਜਿਸ ਗੁਰੂ ਪਾਸੋਂ ਮੈਂ ਪਰਮਾਤਮਾ (ਦਾ ਨਾਮਪ੍ਰਾਪਤ ਕੀਤਾ ਹੈ ਉਸ ਗੁਰੂ ਨੂੰ ਮੈਂ ਆਪਣਾ ਬਣਾ ਲਿਆ ਹੈ l
جِسُ گُر تے ہرِ پائِیا سۄ گُرُ ہم کیِنی 2
میں نے اپنے آپ کو ایسے گرو کے لئے وقف کیا ہے ، جس کے ذریعے میں نے خدا کو پہچان لیا ہے۔

ਗੁਣਦਾਤਾ ਹਰਿ ਰਾਇ ਹੈ ਹਮ ਅਵਗਣਿਆਰੇ 
gundaataa har raa-ay hai ham avgani-aaray.
The Sovereign God is the bestower of virtues, but we are all full of vices.
ਸਾਰੇ ਜਗਤ ਦਾ ਸ਼ਹਿਨਸ਼ਾਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਸਭ ਗੁਣਾਂ ਦੀ ਦਾਤ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈਅਸੀਂ ਜੀਵ ਅਉਗਣਾਂ ਨਾਲ ਭਰੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਾਂ
گُݨداتا ہرِ راءِ ہےَ ہم اوگݨِیارے 
قادر مطلق خدا خوبیوں کو عطا کرنے والا ہے ، لیکن ہم سب برائیوں سے بھرے ہوئے ہیں

ਪਾਪੀ ਪਾਥਰ ਡੂਬਦੇ ਗੁਰਮਤਿ ਹਰਿ ਤਾਰੇ 
paapee paathar doobday gurmat har taaray.
 We sinners sink like stones in this world ocean of vices; through the Guru’s teachings, God ferries us across.
ਅਸੀ ਪਾਪੀ ਜੀਵ ਵਿਕਾਰਾਂ ਦੇ ਸਮੁੰਦਰ ਵਿਚ ਪੱਥਰ ਦੀ ਤਰ੍ਹਾਂ ਡੁੱਬੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਾਂਪਰਮਾਤਮਾ ਸਾਨੂੰ ਗੁਰੂ ਦੀ ਮੱਤ ਦੇ ਕੇ ਪਾਰ ਲੰਘਾਂਦਾ ਹੈ
پاپی پاتھر ڈۄُبدے گُرمتِ ہرِ تارے 
ہم گنہگار دنیا کے وسوسوں کے پتھروں کی طرح ڈوب رہے ہیں۔ گورو کی تعلیمات کے ذریعہ ، خدا نے ہمیں پار کیا

ਤੂੰ ਗੁਣਦਾਤਾ ਨਿਰਮਲਾ ਹਮ ਅਵਗਣਿਆਰੇ 
tooN gundaataa nirmalaa ham avgani-aaray.
O’ God, You are the immaculate bestower of virtues, but we are full of vices.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਤੂੰ ਪਵਿਤ੍ਰਸਰੂਪ ਹੈਂ ਤੂੰ ਗੁਣ ਬਖ਼ਸ਼ਣ ਵਾਲਾ ਹੈਂਅਸੀਂ ਜੀਵ ਅਉਗਣਾਂ ਨਾਲ ਭਰੇ ਪਏ ਹਾਂ
تۄُنّ گُݨداتا نِرملا ہم اوگݨِیارے 
تم خوبیوں کا بے پایاں عطا کرنے والے ہو ، لیکن ہم برائیوں سے بھرے ہوئے ہیں۔

ਹਰਿ ਸਰਣਾਗਤਿ ਰਾਖਿ ਲੇਹੁ ਮੂੜ ਮੁਗਧ ਨਿਸਤਾਰੇ 
har sarnaagat raakh layho moorh mugaDh nistaaray. ||3||
O’ God, we have entered Your refuge; please save us from the vices, just as You have emancipated even the most foolish persons. ||3||
 ਹੇ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਅਸੀਂ ਤੇਰੀ ਸਰਨ ਆਏ ਹਾਂਸਾਨੂੰ ਅਉਗਣਾਂ ਤੋਂ ਬਚਾ ਲੈਜਿਵੇਂ ਤੂੰ ਮਹਾ ਮੂਰਖਾਂ ਪਾਰ ਕਰ ਦਿਤੇ ਹਨ 
ہرِ سرݨاگتِ راکھِ لیہُ مۄُڑ مُگدھ نِستارے 3
ہم آپ کی پناہ میں داخل ہوئے ہیں۔ براہ کرم ہمیں برائیوں سے بچا ، جس طرح آپ نے انتہائی بے وقوف لوگوں کو بھی آزاد کرایا ہے

ਸਹਜੁ ਅਨੰਦੁ ਸਦਾ ਗੁਰਮਤੀ ਹਰਿ ਹਰਿ ਮਨਿ ਧਿਆਇਆ 
sahj anand sadaa gurmatee har har man Dhi-aa-i-aa.
Those who have meditated on God in their mind through the Guru’s teachings, have received eternal poise and bliss.
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਮਤਿ ਤੇ ਤੁਰ ਹਰੀ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਸਦਾ ਸਿਮਰਿਆ ਹੈਉਹ ਸਦਾ ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ ਅਤੇ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦੇ ਹਨ l
سہجُ اننّدُ سدا گُرمتی ہرِ ہرِ منِ دھِیائِیا 
جن لوگوں نے گرو کی تعلیمات کے ذریعہ اپنے ذہن میں خدا کا دھیان کیا ، ان کو ابدی تسکین اور نعمت ملی

ਸਜਣੁ ਹਰਿ ਪ੍ਰਭੁ ਪਾਇਆ ਘਰਿ ਸੋਹਿਲਾ ਗਾਇਆ 
 sajan har parabh paa-i-aa ghar sohilaa gaa-i-aa.
They have realized God, a true friend, and are enjoying such a pleasure, as if a song of joy is being sung in their hearts.
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੂੰ ਹਰਿਪ੍ਰਭੂ ਸੱਜਣ ਮਿਲ ਪੈਂਦਾ ਹੈਉਹ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇਘਰ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਦਾ ਗੀਤ ਗਾਂਦੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ
سجݨُ ہرِ پ٘ربھُ پائِیا گھرِ سۄہِلا گائِیا 
انہوں نے خدا کا ادراک کیا ، ایک سچے دوست ، اور ایسی خوشی سے لطف اندوز ہو رہے ہیں ، جیسے ان کے دلوں میں خوشی کا گانا گایا جا رہا ہو۔

ਹਰਿ ਦਇਆ ਧਾਰਿ ਪ੍ਰਭ ਬੇਨਤੀ ਹਰਿ ਹਰਿ ਚੇਤਾਇਆ 
 har da-i-aa Dhaar parabh bayntee har har chaytaa-i-aa.
O’ God, this is my prayer before You; please show mercy and make me always remember You with loving devotion.
ਹੇ ਹਰੀਹੇ ਪ੍ਰਭੂਮਿਹਰ ਕਰ, (ਮੇਰੀਬੇਨਤੀ (ਸੁਣ), (ਮੈਨੂੰਆਪਣੇ ਨਾਮ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਦੇਹ 
ہرِ دئِیا دھارِ پ٘ربھ بینتی ہرِ ہرِ چیتائِیا 
یہ تیرے حضور میری دعا ہے۔ براہ کرم رحم کریں اور مجھے ہمیشہ محبت کے ساتھ عقیدت سے یاد رکھیں

ਜਨ ਨਾਨਕੁ ਮੰਗੈ ਧੂੜਿ ਤਿਨ ਜਿਨ ਸਤਿਗੁਰੁ ਪਾਇਆ ੧੮੩੮
jan naanak mangai Dhoorh tin jin satgur paa-i-aa. ||4||4||18||38||
Nanak begs for the most humble service of those who have met the True Guru. ||4||4||18||38||
ਦਾਸ ਨਾਨਕ (ਤੇਰੇ ਦਰ ਤੋਂਉਹਨਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਦੀ ਧੂੜ ਮੰਗਦਾ ਹੈ ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੂੰ (ਤੇਰੀ ਮਿਹਰ ਨਾਲਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪਿਆ ਹੈ 
جن نانکُ منّگےَ دھۄُڑِ تِن جِن ستِگُرُ پائِیا 44 18  38 
نانک ان لوگوں کی انتہائی شائستہ خدمت کی دعا کرتا ہے جنھوں نے سچے گرو سے ملاقات کی ہے۔

ਗਉੜੀ ਗੁਆਰੇਰੀ ਮਹਲਾ  ਚਉਥਾ ਚਉਪਦੇ 
ga-orhee gu-aarayree mehlaa 4 cha-uthaa cha-upday
Raag Gauree Gwaarayree, Fourth Gurul, Chau-Padas:
گئُڑی گُیاریری محلا 4 چئُتھا چئُپدے
 ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ 
ik-oNkaar satgur parsaad.
One eternal God, realized by the grace of the true Guru:
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
ایک اونکار ستِگُر پ٘رسادِ 
ایک لازوال خدا ، سچے گرو کے فضل سے احساس ہوا

ਪੰਡਿਤੁ ਸਾਸਤ ਸਿਮ੍ਰਿਤਿ ਪੜਿਆ 
pandit saasat simrit parhi-aa.
The Pandit recites the Shastras and the Simritees (the Hindu holy scriptures).
ਪੰਡਿਤ ਸ਼ਾਸਤਰ ਸਿਮ੍ਰਿਤੀਆਂ (ਆਦਿਕ ਧਰਮ ਪੁਸਤਕਪੜ੍ਹਦਾ ਹੈ,
پنّڈِتُ ساست سِم٘رِتِ پڑِیا 
پنڈت شاستوں اور سمریات کی تلاوت کرتا ہے

ਜੋਗੀ ਗੋਰਖੁ ਗੋਰਖੁ ਕਰਿਆ 
jogee gorakh gorakh kari-aa.
the Yogi meditates on the name of his spiritual leader, Gorakh.
ਜੋਗੀ ਆਪਣੇ ਗੁਰੂ ਗੋਰਖ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਜਾਪ ਕਰਦਾ ਹੈ 
جۄگی گۄرکھُ گۄرکھُ کرِیا 
یوگی اپنے روحانی پیشوا ، گورکھ کے نام پر دھیان دیتے ہیں

ਮੈ ਮੂਰਖ ਹਰਿ ਹਰਿ ਜਪੁ ਪੜਿਆ 
mai moorakh har har jap parhi-aa. ||1||
Me the ignorant, have learned from my Guru only to meditate on Naam.||1||
ਪਰ ਮੈਂ ਮੂਰਖ ਨੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਜਪ ਕਰਨਾ ਹੀ ਆਪਣੇ ਗੁਰੂ ਪਾਸੋਂ ਸਿੱਖਿਆ ਹੈ l 
مےَ مۄُرکھ ہرِ ہرِ جپُ پڑِیا 1
مجھے جاہل ، اپنے گرو سے صرف نام پر غور کرنے کے لئے سیکھا ہے

ਨਾ ਜਾਨਾ ਕਿਆ ਗਤਿ ਰਾਮ ਹਮਾਰੀ 
naa jaanaa ki-aa gat raam hamaaree.
O’ God, I do not know what will be my ultimate fate .
ਹੇ ਮੇਰੇ ਰਾਮ! ਮੈਨੂੰ ਸਮਝ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦੀ ਮੇਰੀ ਕਿਹੋ ਜਿਹੀ ਆਤਮਕ ਦਸ਼ਾ ਹੋ ਜਾਇਗੀ 
نا جانا کِیا گتِ رام ہماری ۔ 
مجھے نہیں معلوم کہ میرا حتمی انجام کیا ہوگا۔

ਹਰਿ ਭਜੁ ਮਨ ਮੇਰੇ ਤਰੁ ਭਉਜਲੁ ਤੂ ਤਾਰੀ  ਰਹਾਉ 
har bhaj man mayray tar bha-ojal too taaree. ||1|| rahaa-o.
O my mind, meditate on God’s Name with loving devotion and swim across the terrifying world-ocean of vices. ||1||Pause||
ਹੇ ਮੇਰੇ ਮਨਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰ (ਤੇਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘ ਜਾ,
ہرِ بھجُ من میرے ترُ بھئُجلُ تۄُ تاری 1 رہاءُ 
اے میرے ذہن ، خدا کے نام پر محبت سے عقیدت کے ساتھ غور کرو اور خوفناک دنیا کے خوفناک دنیا میں تیر دو