Guru Granth Sahib Translation Project

guru-granth-sahib-urdu-page-72

Page 72

ਸੁਰਿ ਨਰ ਮੁਨਿ ਜਨ ਲੋਚਦੇ ਸੋ ਸਤਿਗੁਰਿ ਦੀਆ ਬੁਝਾਇ ਜੀਉ ॥੪॥ ست گرو نے مجھے اس رب کے بارے میں بتایا ہے جس رب کو پانے کو دیوتا، انسان اور بابا خواہش کرتے ہیں۔ ۔4۔
ਸਤਸੰਗਤਿ ਕੈਸੀ ਜਾਣੀਐ ॥ ست سنگتی کس طرح جانی جاسکتی ہے؟
ਜਿਥੈ ਏਕੋ ਨਾਮੁ ਵਖਾਣੀਐ ॥ ایک رب کے نام کا وہاں اظہار ہوتا ہے۔
ਏਕੋ ਨਾਮੁ ਹੁਕਮੁ ਹੈ ਨਾਨਕ ਸਤਿਗੁਰਿ ਦੀਆ ਬੁਝਾਇ ਜੀਉ ॥੫॥ اے نانک! ہری نام ہی رب کا حکم ہے، یہ بات مجھے گرو جی نے سمجھادی ہے۔۔5۔
ਇਹੁ ਜਗਤੁ ਭਰਮਿ ਭੁਲਾਇਆ ॥ یہ دنیا شک کی وجہ سے وہم بھول بلییا میں پڑا ہوا ہے۔
ਆਪਹੁ ਤੁਧੁ ਖੁਆਇਆ ॥ اے رب ! تم نے خود ہی انسانوں کے اعمال کے مطابق انہیں بھلایا ہے۔
ਪਰਤਾਪੁ ਲਗਾ ਦੋਹਾਗਣੀ ਭਾਗ ਜਿਨਾ ਕੇ ਨਾਹਿ ਜੀਉ ॥੬॥ وہ انسان جن کی قسمت میں رب کی ملاقات نہیں، اپنے شوہر سے جدا عورت کی طرح وہ ہر روز تڑپتے رہتے ہیں۔6۔
ਦੋਹਾਗਣੀ ਕਿਆ ਨੀਸਾਣੀਆ ॥ بیوہ خواتین کے کیا علامات ہیں؟
ਖਸਮਹੁ ਘੁਥੀਆ ਫਿਰਹਿ ਨਿਮਾਣੀਆ ॥ وہ شوہر کے ذریعے نظر انداز،بے قدر ہوکر بھٹکتی رہتی ہے۔
ਮੈਲੇ ਵੇਸ ਤਿਨਾ ਕਾਮਣੀ ਦੁਖੀ ਰੈਣਿ ਵਿਹਾਇ ਜੀਉ ॥੭॥ ان بدقسمت عورتوں کے کپڑے گندے ہوتے ہیں اور ہر روز تڑپ تڑپ کر رات گزارتی ہیں۔7۔
ਸੋਹਾਗਣੀ ਕਿਆ ਕਰਮੁ ਕਮਾਇਆ ॥ شادی شدہ عورت نے آخر کیا نیکیاں کمائیں ہے؟
ਪੂਰਬਿ ਲਿਖਿਆ ਫਲੁ ਪਾਇਆ ॥ اس رب نے پچھلے جنم کے کسی نیکی کا پھل عطا کیا ہے۔
ਨਦਰਿ ਕਰੇ ਕੈ ਆਪਣੀ ਆਪੇ ਲਏ ਮਿਲਾਇ ਜੀਉ ॥੮॥ اپنا فضل و کرم کرکے رب ان کو اپنے ساتھ ملاتا ہے۔8۔
ਹੁਕਮੁ ਜਿਨਾ ਨੋ ਮਨਾਇਆ ॥ وہ متجسس مخلوق نے رب کے حکم کی تعمیل کی ہے،
ਤਿਨ ਅੰਤਰਿ ਸਬਦੁ ਵਸਾਇਆ ॥ وہ گرو کی حقیقی تعلیمات ذہن میں رکھتے ہیں۔
ਸਹੀਆ ਸੇ ਸੋਹਾਗਣੀ ਜਿਨ ਸਹ ਨਾਲਿ ਪਿਆਰੁ ਜੀਉ ॥੯॥ ایسی دوست حق پر عمل کرنے والی بیوی ہے، جو اپنے محبوب سے پیار کرتی ہے۔۔9۔
ਜਿਨਾ ਭਾਣੇ ਕਾ ਰਸੁ ਆਇਆ ॥ جو رب کی مرضی کے مطابق خوشی محسوس کرتی ہیں،
ਤਿਨ ਵਿਚਹੁ ਭਰਮੁ ਚੁਕਾਇਆ ॥ ان کے اندر سے شکوک و شبہات ختم ہوجاتے ہیں۔
ਨਾਨਕ ਸਤਿਗੁਰੁ ਐਸਾ ਜਾਣੀਐ ਜੋ ਸਭਸੈ ਲਏ ਮਿਲਾਇ ਜੀਉ ॥੧੦॥ اے نانک! ست گرو ایسا مہربان ہے، جو سب کو رب کے ساتھ ملا دیتا ہے۔10۔
ਸਤਿਗੁਰਿ ਮਿਲਿਐ ਫਲੁ ਪਾਇਆ ॥ وہ ست گرو سے مل کر ہری نام نما پھل حاصل کرلیتا ہے۔
ਜਿਨਿ ਵਿਚਹੁ ਅਹਕਰਣੁ ਚੁਕਾਇਆ ॥ جو اپنے کبر کو ختم کر دتیا ہے،
ਦੁਰਮਤਿ ਕਾ ਦੁਖੁ ਕਟਿਆ ਭਾਗੁ ਬੈਠਾ ਮਸਤਕਿ ਆਇ ਜੀਉ ॥੧੧॥ اس کی کم عقل کی تکلیف ختم ہوجاتی ہے اور اس کی پیشانی پر اچھی قسمت لکھ دی جاتی ہے۔11۔
ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਤੇਰੀ ਬਾਣੀਆ ॥ اے رب ! تیری زبان امرت کی طرح ہے۔
ਤੇਰਿਆ ਭਗਤਾ ਰਿਦੈ ਸਮਾਣੀਆ ॥ یہ تیرے عقیدت مندوں کے ذہنوں میں گھرا ہوا ہے۔
ਸੁਖ ਸੇਵਾ ਅੰਦਰਿ ਰਖਿਐ ਆਪਣੀ ਨਦਰਿ ਕਰਹਿ ਨਿਸਤਾਰਿ ਜੀਉ ॥੧੨॥ تمہاری خدمت میں ہی حقیقی خوشی کا حصول ہے اور اپنی مہربانی سے تم اپنے عقیدت مندوں کو دنیاوی سمندر سے پار کردیتے ہو۔12۔
ਸਤਿਗੁਰੁ ਮਿਲਿਆ ਜਾਣੀਐ ॥ ਜਿਤੁ ਮਿਲਿਐ ਨਾਮੁ ਵਖਾਣੀਐ ॥ ستگرو سے ملاقات تب ہی سمجھاجاتا ہے۔اگر اس ملاقات کے ذریعے رب کےنام کا ذکر کیا جائے
ਸਤਿਗੁਰ ਬਾਝੁ ਨ ਪਾਇਓ ਸਭ ਥਕੀ ਕਰਮ ਕਮਾਇ ਜੀਉ ॥੧੩॥ ستگرو کے بغیر کسی کو بھی رب حاصل نہیں ہوا۔ ساری دنیا دینی کام کرتے کرتے تھک گئی ہے۔13۔
ਹਉ ਸਤਿਗੁਰ ਵਿਟਹੁ ਘੁਮਾਇਆ ॥ میں اپنے ستگرو پر قربان جاتا ہوں۔
ਜਿਨਿ ਭ੍ਰਮਿ ਭੁਲਾ ਮਾਰਗਿ ਪਾਇਆ ॥ جس نے مجھے حوس کے وہم سے نکال کر راہِ راست پر لگایا ہے۔
ਨਦਰਿ ਕਰੇ ਜੇ ਆਪਣੀ ਆਪੇ ਲਏ ਰਲਾਇ ਜੀਉ ॥੧੪॥ اگر ست گرو اپنا کرم کرے تو یہ آدمی کو اپنی صحبت میں جوڑ لیتا ہے۔14۔
ਤੂੰ ਸਭਨਾ ਮਾਹਿ ਸਮਾਇਆ ॥ اے رب! تم تمام مخلوقات کے اندر سمائے ہوئے ہو۔
ਤਿਨਿ ਕਰਤੈ ਆਪੁ ਲੁਕਾਇਆ ॥- واہے گرو نے اپنا نور مخفی طریقے سے انسان کے دل میں رکھا ہوا ہے۔
ਨਾਨਕ ਗੁਰਮੁਖਿ ਪਰਗਟੁ ਹੋਇਆ ਜਾ ਕਉ ਜੋਤਿ ਧਰੀ ਕਰਤਾਰਿ ਜੀਉ ॥੧੫॥ اے نانک! جس شخص کے دل میں رب نے اپنا نور رکھا ہوا ہے، رب گرو کے ذریعہ اس انسان کے دل میں ظاہر ہوجاتا ہے۔ 15۔
ਆਪੇ ਖਸਮਿ ਨਿਵਾਜਿਆ ॥ اے رب! تم نے ہی جسم کی مورتی گڑھ کر
ਜੀਉ ਪਿੰਡੁ ਦੇ ਸਾਜਿਆ ॥ اس میں زندگی ڈال کر مجھے پیدا کیا ہے۔
ਆਪਣੇ ਸੇਵਕ ਕੀ ਪੈਜ ਰਖੀਆ ਦੁਇ ਕਰ ਮਸਤਕਿ ਧਾਰਿ ਜੀਉ ॥੧੬॥ اپنے دونوں ہاتھ اس کے سر پر رکھ کر رب اپنے پرستار کی عزت برقرار رکھتا ہے۔
ਸਭਿ ਸੰਜਮ ਰਹੇ ਸਿਆਣਪਾ ॥ زیادہ اٹکلیں اور چالاکیاں کسی کام نہیں آتی۔
ਮੇਰਾ ਪ੍ਰਭੁ ਸਭੁ ਕਿਛੁ ਜਾਣਦਾ ॥ میرا رب سب کچھ جانتا ہے۔
ਪ੍ਰਗਟ ਪ੍ਰਤਾਪੁ ਵਰਤਾਇਓ ਸਭੁ ਲੋਕੁ ਕਰੈ ਜੈਕਾਰੁ ਜੀਉ ॥੧੭॥ رب نے میری شان ہر جگہ ظاہر کیا ہے اور سب میری تعریف کرنے لگے ہیں۔
ਮੇਰੇ ਗੁਣ ਅਵਗਨ ਨ ਬੀਚਾਰਿਆ ॥ رب نے میری خوبیوں اور خامیوں پر دھیان نہیں دیا،
ਪ੍ਰਭਿ ਅਪਣਾ ਬਿਰਦੁ ਸਮਾਰਿਆ ॥ اس نے تو صرف اپنی بڑائی کی لاج نبھائی ہے۔
ਕੰਠਿ ਲਾਇ ਕੈ ਰਖਿਓਨੁ ਲਗੈ ਨ ਤਤੀ ਵਾਉ ਜੀਉ ॥੧੮॥ رب نے اپنے گلے لگاکر میری حفاظت کی ہے اور مجھے گرم ہوا بھی نہیں چھوتی۔18۔
ਮੈ ਮਨਿ ਤਨਿ ਪ੍ਰਭੂ ਧਿਆਇਆ ॥ اپنے جسم و دماغ سے میں نے رب کی حمد کی ہے۔
ਜੀਇ ਇਛਿਅੜਾ ਫਲੁ ਪਾਇਆ ॥ اس لیے مجھے مطلوبہ نتیجہ حاصل ہوا ہے۔
ਸਾਹ ਪਾਤਿਸਾਹ ਸਿਰਿ ਖਸਮੁ ਤੂੰ ਜਪਿ ਨਾਨਕ ਜੀਵੈ ਨਾਉ ਜੀਉ ॥੧੯॥ اے رب ! تم شہنشاہوں کے بھی شہنشاہ ہو، اس لیے اے نانک! میں تمہارے ہی نام کا ذکر کرنے سے زندگی جیتا ہوں۔19۔
error: Content is protected !!
Scroll to Top
https://ijwem.ulm.ac.id/pages/demo/ slot gacor https://andong-butuh.purworejokab.go.id/resources/demo/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/assets/files/demo/ https://bppkad.mamberamorayakab.go.id/wp-content/modemo/ http://mesin-dev.ft.unesa.ac.id/mesin/demo-slot/ http://gsgs.lingkungan.ft.unand.ac.id/includes/demo/ https://kemahasiswaan.unand.ac.id/plugins/actionlog/
https://jackpot-1131.com/ https://mainjp1131.com/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/template-surat/kk/kaka-sbobet/
https://ijwem.ulm.ac.id/pages/demo/ slot gacor https://andong-butuh.purworejokab.go.id/resources/demo/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/assets/files/demo/ https://bppkad.mamberamorayakab.go.id/wp-content/modemo/ http://mesin-dev.ft.unesa.ac.id/mesin/demo-slot/ http://gsgs.lingkungan.ft.unand.ac.id/includes/demo/ https://kemahasiswaan.unand.ac.id/plugins/actionlog/
https://jackpot-1131.com/ https://mainjp1131.com/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/template-surat/kk/kaka-sbobet/