Guru Granth Sahib Translation Project

guru-granth-sahib-urdu-page-65

Page 65

ਸਤਿਗੁਰੁ ਸੇਵਿ ਗੁਣ ਨਿਧਾਨੁ ਪਾਇਆ ਤਿਸ ਕੀ ਕੀਮ ਨ ਪਾਈ ॥ جس نے ستگرو کی بھرپور خدمت کر کے خوبيوں کے ذخائر رب كو حاصل کرلیا ہے اس کی قدر کا اندازہ نہیں لگایا جا سکتا۔
ਪ੍ਰਭੁ ਸਖਾ ਹਰਿ ਜੀਉ ਮੇਰਾ ਅੰਤੇ ਹੋਇ ਸਖਾਈ ॥੩॥ معبود رب میرا دوست ہے اور آخری وقت میرا مددگار ہو گا۔3
ਪੇਈਅੜੈ ਜਗਜੀਵਨੁ ਦਾਤਾ ਮਨਮੁਖਿ ਪਤਿ ਗਵਾਈ ॥ دنیا کا پالنے والا، زندگی دینے والا، پروردگار رب اس دنیا میں ہى ہے جسے اسى دنیا میں پايا جاسکتا ہے۔ اس سے بے خبر، بد نصيب انسان نے اپنی عزت گنواں دى ہے۔
ਬਿਨੁ ਸਤਿਗੁਰ ਕੋ ਮਗੁ ਨ ਜਾਣੈ ਅੰਧੇ ਠਉਰ ਨ ਕਾਈ ॥ ستگرو کے بغیر کوئی بھی رب کا راستہ نہیں جانتا۔ جاہل انسان کو آخرت میں جگہ نہیں ملنا ۔
ਹਰਿ ਸੁਖਦਾਤਾ ਮਨਿ ਨਹੀ ਵਸਿਆ ਅੰਤਿ ਗਇਆ ਪਛੁਤਾਈ ॥੪॥ اگر سكون دینے والا رب انسان کے دل میں نہیں رہتا تو آخری وقت وہ انسان پچھتاوا کرتا ہوا چلا جاتا ہے۔
ਪੇਈਅੜੈ ਜਗਜੀਵਨੁ ਦਾਤਾ ਗੁਰਮਤਿ ਮੰਨਿ ਵਸਾਇਆ॥ جس نے گرو سے نصیحت لے کر دنياوى زندگی اور زندگی عطا كرنے والے رب كو اپنے ذہن میں بسا لیا ہے،
ਅਨਦਿਨੁ ਭਗਤਿ ਕਰਹਿ ਦਿਨੁ ਰਾਤੀ ਹਉਮੈ ਮੋਹੁ ਚੁਕਾਇਆ ॥ وہ روزانہ رب کی عبادت کرتا ہے اور وہ اپنی انا اور لگاؤ ​​کو مٹا دیتا ہے۔
ਜਿਸੁ ਸਿਉ ਰਾਤਾ ਤੈਸੋ ਹੋਵੈ ਸਚੇ ਸਚਿ ਸਮਾਇਆ ॥੫॥ انسان جس کی محبت میں مگن رہتا ہے، وہ خود بھی اس جيسا بن جاتا ہے اور سچ میں ہى سما جاتا ہے۔ 5۔
ਆਪੇ ਨਦਰਿ ਕਰੇ ਭਾਉ ਲਾਏ ਗੁਰ ਸਬਦੀ ਬੀਚਾਰਿ ॥ جس پر رب خود نظر کرم کرتا ہے، اس کے اندر اپنی محبت پیدا کر دیتا ہے۔ پھر وہ گرو کی آواز کے ذریعے رب کی شان کے بارے میں سوچتا ہے۔
ਸਤਿਗੁਰੁ ਸੇਵਿਐ ਸਹਜੁ ਊਪਜੈ ਹਉਮੈ ਤ੍ਰਿਸਨਾ ਮਾਰਿ ॥ ستگرو کی خدمت سے انسان میں بڑا سكون پیدا ہوتا ہے اور انسان کی انا اور پیاس مٹ جاتی ہے۔
ਹਰਿ ਗੁਣਦਾਤਾ ਸਦ ਮਨਿ ਵਸੈ ਸਚੁ ਰਖਿਆ ਉਰ ਧਾਰਿ ॥੬॥ خوبی عطا كر نے والا رب معاف کرنے والا ہے، وہ ہمیشہ ہى اس کے ذہن میں رہتا ہے، جو سچ کو اپنے دل میں بسائے رکھتا ہے۔ 6۔
ਪ੍ਰਭੁ ਮੇਰਾ ਸਦਾ ਨਿਰਮਲਾ ਮਨਿ ਨਿਰਮਲਿ ਪਾਇਆ ਜਾਇ ॥ میرا رب ہمیشہ پاک ہے۔ پاک ذہن کے ساتھ ہی وه حاصل ہوتا ہے۔
ਨਾਮੁ ਨਿਧਾਨੁ ਹਰਿ ਮਨਿ ਵਸੈ ਹਉਮੈ ਦੁਖੁ ਸਭੁ ਜਾਇ ॥ اگر خوبيوں کے ذخائر رب کا نام اس كے دل میں بس جائے،تو كبر اور غم ختم ہو جاتے ہیں۔
ਸਤਿਗੁਰਿ ਸਬਦੁ ਸੁਣਾਇਆ ਹਉ ਸਦ ਬਲਿਹਾਰੈ ਜਾਉ ॥੭॥ ستگرو نے مجھے رب کا نام سنایا ہے۔ میں ہمیشہ ان پر قربان جاتا ہوں۔ 7۔
ਆਪਣੈ ਮਨਿ ਚਿਤਿ ਕਹੈ ਕਹਾਏ ਬਿਨੁ ਗੁਰ ਆਪੁ ਨ ਜਾਈ ॥ انسان کے اندرونی من کا غرور کہنے کہلانے یا پڑھنے پڑھانے سے دور نہیں ہوتا اور گرو کے بغیر غرور کی کوئی انتہا نہیں ۔
ਹਰਿ ਜੀਉ ਭਗਤਿ ਵਛਲੁ ਸੁਖਦਾਤਾ ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਮੰਨਿ ਵਸਾਈ ॥ ہری خود ہی عقیدت و محبت ہے،اور سکون عطا کرنے والا ہے۔ وہ مہربانی کر کے خود ہی من میں آکر بس جاتا ہے۔
ਨਾਨਕ ਸੋਭਾ ਸੁਰਤਿ ਦੇਇ ਪ੍ਰਭੁ ਆਪੇ ਗੁਰਮੁਖਿ ਦੇ ਵਡਿਆਈ ॥੮॥੧॥੧੮॥ اے نانک! رب خود ہی گرو کے ذریعے سے انسان کو شان، خوبصورتی اور شہرت عطا کرتا ہے۔ 8۔1۔18
ਸਿਰੀਰਾਗੁ ਮਹਲਾ ੩ ॥ شری راگو محلہ 3۔
ਹਉਮੈ ਕਰਮ ਕਮਾਵਦੇ ਜਮਡੰਡੁ ਲਗੈ ਤਿਨ ਆਇ ॥ جو انسان اپنا کام تکبر سے کرتے ہیں، انہیں یمدوتوں کی بڑی اذیت برداشت کرنی پڑتی ہیں۔
ਜਿ ਸਤਿਗੁਰੁ ਸੇਵਨਿ ਸੇ ਉਬਰੇ ਹਰਿ ਸੇਤੀ ਲਿਵ ਲਾਇ ॥੧॥ جو لوگ ستگرو کی خدمت کرتے ہیں، وہ رب میں شعور لگاکر یمدوتوں کی اذیت سے بچ جاتے ہیں۔
ਮਨ ਰੇ ਗੁਰਮੁਖਿ ਨਾਮੁ ਧਿਆਇ ॥ اے میرے من! گرو کی صحبت میں رب کی عبادت کر۔
ਧੁਰਿ ਪੂਰਬਿ ਕਰਤੈ ਲਿਖਿਆ ਤਿਨਾ ਗੁਰਮਤਿ ਨਾਮਿ ਸਮਾਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥ جن کی قسمت میں خالق نے پہلے سے ہی خاص کر لکھا ہے، وه ستگرو کی تعلیم کے ذریعے نام کے اندر مگن ہو جاتے ہیں۔ 1 وقفہ
ਵਿਣੁ ਸਤਿਗੁਰ ਪਰਤੀਤਿ ਨ ਆਵਈ ਨਾਮਿ ਨ ਲਾਗੋ ਭਾਉ ॥ ستگرو کے بغیر انسان کے دل میں رب کے متعلق عقیدت قائم نہیں ہوتی اور نہ ہی رب نام کے ساتھ محبت پیدا ہوتی ہے۔
ਸੁਪਨੈ ਸੁਖੁ ਨ ਪਾਵਈ ਦੁਖ ਮਹਿ ਸਵੈ ਸਮਾਇ ॥੨॥ ایسے انسان کو خواب میں بھی سکون نہیں حاصل ہوتا اور وہ درد میں ہی سوتا اور مرتا ہے۔ 2۔
ਜੇ ਹਰਿ ਹਰਿ ਕੀਚੈ ਬਹੁਤੁ ਲੋਚੀਐ ਕਿਰਤੁ ਨ ਮੇਟਿਆ ਜਾਇ ॥ چاہے جاندار رب کا نام لینے کی شدید خواہش رکھتا ہو لیکن اس کے پچھلے جنم کے اعمال مٹائے نہیں جا سکتے۔
ਹਰਿ ਕਾ ਭਾਣਾ ਭਗਤੀ ਮੰਨਿਆ ਸੇ ਭਗਤ ਪਏ ਦਰਿ ਥਾਇ ॥੩॥ عقیدت مندوں نے رب کی مرضی کو ہی مانا ہے اور ایسے عقیدت مند رب کے دربار میں مقبول ہوئے ہیں۔ 3۔
ਗੁਰੁ ਸਬਦੁ ਦਿੜਾਵੈ ਰੰਗ ਸਿਉ ਬਿਨੁ ਕਿਰਪਾ ਲਇਆ ਨ ਜਾਇ ॥ گرو بڑے پیار اور احساس سے پیغام کی تبلیغ کرتے ہیں، لیکن ان کی مہربانی کے بغیر نام حاصل نہیں ہو سکتا۔
ਜੇ ਸਉ ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਨੀਰੀਐ ਭੀ ਬਿਖੁ ਫਲੁ ਲਾਗੈ ਧਾਇ ॥੪॥ چاہے زہریلے پودے کو سیکڑوں بار امرت رس سے سینچا جائے، پھر بھی زہریلے پودے پر زہریلے پھل ہی لگیں گے ۔ 4۔
ਸੇ ਜਨ ਸਚੇ ਨਿਰਮਲੇ ਜਿਨ ਸਤਿਗੁਰ ਨਾਲਿ ਪਿਆਰੁ ॥ وہ آدمی سچا اور پاک ہے، جن کا ستگرو کے ساتھ محبت ہے۔
ਸਤਿਗੁਰ ਕਾ ਭਾਣਾ ਕਮਾਵਦੇ ਬਿਖੁ ਹਉਮੈ ਤਜਿ ਵਿਕਾਰੁ ॥੫॥ وہ ستگرو کی مرضی کے مطابق کام کرتے ہیں اور کبر اور برائیوں کے زہر کو چھوڑ دیتے ہیں ۔ 5
ਮਨਹਠਿ ਕਿਤੈ ਉਪਾਇ ਨ ਛੂਟੀਐ ਸਿਮ੍ਰਿਤਿ ਸਾਸਤ੍ਰ ਸੋਧਹੁ ਜਾਇ ॥ دماغ کی ضد کی وجہ سے کسی بھی طریقے سے انسان آزاد نہیں ہو سکتا۔ چاہے اسمرتی ، مستند نصوص صحیفے کا مطالعہ کر کے دیکھ لے ۔
ਮਿਲਿ ਸੰਗਤਿ ਸਾਧੂ ਉਬਰੇ ਗੁਰ ਕਾ ਸਬਦੁ ਕਮਾਇ ॥੬॥ جو سادھو کی صحبت میں مل کر گرو کے کلام کی مشق کرتے ہیں، وہ حیات و موت کے چکر سے آزاد ہو جاتے ہیں۔ 6۔
ਹਰਿ ਕਾ ਨਾਮੁ ਨਿਧਾਨੁ ਹੈ ਜਿਸੁ ਅੰਤੁ ਨ ਪਾਰਾਵਾਰੁ ॥ ہری کا نام خوبیوں کا انمول ذخیرہ ہے، جس کی کوئی انتہا یا حد نہیں۔
ਗੁਰਮੁਖਿ ਸੇਈ ਸੋਹਦੇ ਜਿਨ ਕਿਰਪਾ ਕਰੇ ਕਰਤਾਰੁ ॥੭॥ رب کی جن مہربانی ہوتی ہے، وہی گرومکھ شان پاتے ہیں۔ 7
ਨਾਨਕ ਦਾਤਾ ਏਕੁ ਹੈ ਦੂਜਾ ਅਉਰੁ ਨ ਕੋਇ ॥ اے نانک! ایک ہی رب تمام جانداروں کا داتا ہے، اور دوسرا کوئی نہیں۔
ਗੁਰ ਪਰਸਾਦੀ ਪਾਈਐ ਕਰਮਿ ਪਰਾਪਤਿ ਹੋਇ ॥੮॥੨॥੧੯॥ گرو کی مہربانی سے ہی رب ملتا ہے اور قسمت سے ہی گرو جی ملتے ہیں ۔ 8۔ 2۔ 19۔
error: Content is protected !!
Scroll to Top
slot gacor slot demo https://ijwem.ulm.ac.id/pages/demo/ situs slot gacor https://bppkad.mamberamorayakab.go.id/wp-content/modemo/ http://mesin-dev.ft.unesa.ac.id/mesin/demo-slot/ http://gsgs.lingkungan.ft.unand.ac.id/includes/demo/ https://kemahasiswaan.unand.ac.id/plugins/actionlog/ https://bappelitbangda.bangkatengahkab.go.id/storage/images/x-demo/
https://jackpot-1131.com/ https://mainjp1131.com/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/template-surat/kk/kaka-sbobet/
slot gacor slot demo https://ijwem.ulm.ac.id/pages/demo/ situs slot gacor https://bppkad.mamberamorayakab.go.id/wp-content/modemo/ http://mesin-dev.ft.unesa.ac.id/mesin/demo-slot/ http://gsgs.lingkungan.ft.unand.ac.id/includes/demo/ https://kemahasiswaan.unand.ac.id/plugins/actionlog/ https://bappelitbangda.bangkatengahkab.go.id/storage/images/x-demo/
https://jackpot-1131.com/ https://mainjp1131.com/ https://triwarno-banyuurip.purworejokab.go.id/template-surat/kk/kaka-sbobet/