Urdu-Page-379

 ਪੀੜ ਗਈ ਫਿਰਿ ਨਹੀ ਦੁਹੇਲੀ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
peerh ga-ee fir nahee duhaylee. ||1|| rahaa-o.
his pain is dispelled and he is never in grief again. ||1||Pause||
ਉਸ ਦਾ ਹਰੇਕ ਕਿਸਮ ਦਾ ਦੁੱਖਦਰਦ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਅਤੇ ਉਹ ਮੁੜ ਕੇ ਦੁਖੀ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦੀ  ਰਹਾਉ 
 پیِڑ گئیِ پھِرِ نہیِ دُہیلیِ  رہاءُ 
پیڑ ۔ دکھ ۔ عذاب ۔ وہیلی ۔ دکھی ۔
اس کے ہر قسم کےد کھ درد اور عذاب مٹ جاتے ہیں (
1)رہاؤ۔ 

 ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਚਰਨ ਸੰਗਿ ਮੇਲੀ ॥
kar kirpaa charan sang maylee.
The one, on whom showing mercy, God attunes to His loving devotion,
ਜਿਸ ਜੀਵ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਕਿਰਪਾ ਕਰ ਕੇ ਆਪਣੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਜੋੜ ਲੈਂਦਾ ਹੈ,
 کرِ کِرپا چرن سنّگِ میلیِ 
 جسے خدا خود اپنی کرم وعنایت سے اپنے ساتھ ملا لیتا ہے 

 ਸੂਖ ਸਹਜ ਆਨੰਦ ਸੁਹੇਲੀ ॥੧॥
sookh sahj aanand suhaylee. ||1||
enjoys comforts of life and attains equipoise and bliss. ||1||
ਉਸ ਦੇ ਅੰਦਰ ਸੁਖ ਆਨੰਦ ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ  ਵੱਸਦੇ ਹਨ ਉਸ ਦਾ ਜੀਵਨ ਸੁਖੀ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
 سوُکھ سہج آننّد سُہیلیِ  
اس کےد ل میں روحانی سکون روحانی خوشی بس جاتی ہے اور زندگی میں آرام و آسائش ملتی ہے ۔

 ਸਾਧਸੰਗਿ ਗੁਣ ਗਾਇ ਅਤੋਲੀ ॥
saaDhsang gun gaa-ay atolee.
By singing praises of God in the congregation of the saintly persons, he becomes so virtuous that his worth cannot be evaluated.
ਸਤਿਸੰਗਤ ਦੇ ਅੰਦਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਜੱਸ ਗਾਇਨ ਕਰਕੇ ਉਸ ਦਾ ਜੀਵਨ ਇਤਨਾ ਉੱਚਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ਕਿ ਉਹ ਅਤੋਲ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ 
 سادھسنّگِ گُنھ گاءِ اتولیِ 
سادھ سنگ۔ پاکدامن کے ساتھ۔ اتولی ۔ جس کے کا وزن نہ ہو سکے بلند اہمیت۔
پاکدامن عارفان کی صحبت و قربت میں حمدو ثناہ سے

 ਹਰਿ ਸਿਮਰਤ ਨਾਨਕ ਭਈ ਅਮੋਲੀ ॥੨॥੩੫॥
har simrat naanak bha-ee amolee. ||2||35||
O’ Nanak, by meditating on God, he becomes invaluable. ||2||35||
ਹੇ ਨਾਨਕਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਦੁਆਰਾ ਉਹ ਮੋਲਕ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ੩੫
 ہرِ سِمرت نانک بھئیِ امولیِ ੩੫ 
ہر سمرت ۔ الہٰی یاد وریاض سے امولی ۔ جس کی اتنی قیمت جو بیان نہ ہو سکے ۔
اے نانک ۔ انسان اتنا بلند عظمت ہو جاتا ہے جس کی قیمت کا اندازہ نہیں ہو سکتا ۔ 

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ॥
aasaa mehlaa 5.
Raag Aasaa, Fifth Guru:
 آسا مہلا   
 ਕਾਮ ਕ੍ਰੋਧ ਮਾਇਆ ਮਦ ਮਤਸਰ ਏ ਖੇਲਤ ਸਭਿ ਜੂਐ ਹਾਰੇ ॥
kaam kroDh maa-i-aa mad matsar ay khaylat sabh joo-ai haaray.
One who joins the holy congregation is able to destroy his lust, anger, intoxication of worldly wealth and jealousy in the game of life.
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ ਮਿਲ ਬੈਠਦਾ ਹੈ ਉਹ ਕਾਮਕ੍ਰੋਧਮਾਇਆ ਦਾ ਮੋਹਅਹੰਕਾਰਈਰਖਾਇਹਨਾਂ ਸਾਰੇ ਵਿਕਾਰਾਂ ਨੂੰ (ਮਾਨੋਜੂਏ ਦੀ ਬਾਜ਼ੀ ਵਿਚ ਖੇਡ ਕੇ ਹਾਰ ਦੇਂਦਾ ਹੈ,
 کام ک٘رودھ مائِیا مد متسراے کھیلت سبھِ جوُئےَ ہارے 
جو شخص مقدس جماعت میں شامل ہوتا ہے وہ زندگی کے کھیل میں اپنی ہوس ، غصے ، دنیاوی دولت کی نشہ اور حسد کو ختم کرنے کے قابل ہوتا ہے

 ਸਤੁ ਸੰਤੋਖੁ ਦਇਆ ਧਰਮੁ ਸਚੁ ਇਹ ਅਪੁਨੈ ਗ੍ਰਿਹ ਭੀਤਰਿ ਵਾਰੇ ॥੧॥
sat santokh da-i-aa Dharam sach ih apunai garih bheetar vaaray. ||1|| and brings chastity, contentment, compassion, faith and truth in his heart. ||1||
ਅਤੇ ਸਤ ਸੰਤੋਖ ਦਇਆ ਧਰਮ ਸੱਚਇਹਨਾਂ ਗੁਣਾਂ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇਘਰ ਵਿਚ ਲੈ ਆਉਂਦਾ ਹੈ  
 ستُ سنّتوکھُ دئِیا دھرمُ سچُ اِہ اپُنےَ گ٘رِہ بھیِترِ ۄارے 
اور اس کے دل میں عفت ، اطمینان ، شفقت ، ایمان اور سچائی لاتا ہے

 ਜਨਮ ਮਰਨ ਚੂਕੇ ਸਭਿ ਭਾਰੇ ॥
janam maran chookay sabh bhaaray.
His cycle of birth and death ends along with all unnecessary responsibilities.
 ਉਸ ਦੇ ਜਨਮ ਮਰਨ ਦੇ ਗੇ ਮੁੱਕ ਗਏ ਉਸ ਦੀਆਂ (ਆਪਣੇ ਆਪ ਆਪਣੇ ਸਿਰ ਉਤੇ ਲਈਆਂਜ਼ਿੰਮੇਵਾਰੀਆਂ ਮੁੱਕ ਗਈਆਂ l 
 جنم مرن چوُکے سبھِ بھارے 
اس کی پیدائش اور موت کا چکر تمام غیر ضروری ذمہ داریوں کے ساتھ ختم ہوتا ہے

 ਮਿਲਤ ਸੰਗਿ ਭਇਓ ਮਨੁ ਨਿਰਮਲੁ ਗੁਰਿ ਪੂਰੈ ਲੈ ਖਿਨ ਮਹਿ ਤਾਰੇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
milat sang bha-i-o man nirmal gur poorai lai khin meh taaray. ||1|| rahaa-o.
By joining the holy congregation, mind becomes immaculate and in an instant the perfect Guru saves him from the vices. ||1||Pause||
ਸਾਧ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ ਮਿਲ ਬੈਠਿਆਂ ਮਨ ਪਵਿਤ੍ਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ, (ਸਾਧ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ ਬੈਠਣ ਵਾਲੇ ਨੂੰਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਨੇ ਇਕ ਖਿਨ ਵਿਚ (ਵਿਕਾਰਾਂ ਦੇ ਸਮੁੰਦਰ ਤੋਂਪਾਰ ਲੰਘਾ ਲਿਆ  ਰਹਾਉ 
 مِلت سنّگِ بھئِئو منُ نِرملُ گُرِ پوُرےَ لےَ کھِن مہِ تارے  رہاءُ 
مقدس جماعت میں شامل ہونے سے ، ذہن تقویت پا جاتا ہے اور ایک دم ہی کامل گرو اسے برائیوں سے بچاتا ہے۔

 ਸਭ ਕੀ ਰੇਨੁ ਹੋਇ ਰਹੈ ਮਨੂਆ ਸਗਲੇ ਦੀਸਹਿ ਮੀਤ ਪਿਆਰੇ ॥
sabh kee rayn ho-ay rahai manoo-aa saglay deeseh meet pi-aaray.
His mind becomes so humble, as if he is the dust of the feet of all; everyone seem dear friends to him.
ਉਸ ਦਾ ਮਨ ਸਭਨਾਂ ਦੀ ਚਰਨਧੂੜ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈਉਸ ਨੂੰ (ਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀ ਦੇਸਾਰੇ ਜੀਵ ਪਿਆਰੇ ਮਿੱਤਰ ਦਿੱਸਦੇ ਹਨ l
 سبھ کیِ رینُ ہوءِ رہےَ منوُیا سگلے دیِسہِ میِت پِیارے 
اس کا دماغ اتنا عاجز ہوجاتا ہے ، گویا وہ سب کے پاؤں کی خاک ہے۔ ہر ایک اسے عزیز دوست لگتا ہے

 ਸਭ ਮਧੇ ਰਵਿਆ ਮੇਰਾ ਠਾਕੁਰੁ ਦਾਨੁ ਦੇਤ ਸਭਿ ਜੀਅ ਸਮ੍ਹ੍ਹਾਰੇ ॥੨॥
sabh maDhay ravi-aa mayraa thaakur daan dayt sabh jee-a samHaaray. ||2||
He understands that my Master-God is pervading in all and sustains all beings by providing bounties.|2||
(ਉਸ ਨੂੰ ਪ੍ਰਤੱਖ ਦਿੱਸਦਾ ਹੈ ਕਿਮੇਰਾ ਪ੍ਰਭੂ ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਵਿਚ ਮੌਜੂਦ ਹੈ ਤੇ ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਦਾਤਾਂ ਦੇ ਦੇ ਕੇ ਸਭ ਦੀ ਸੰਭਾਲ ਕਰ ਰਿਹਾ ਹੈ 
 سبھ مدھے رۄِیا میرا ٹھاکُرُ دانُ دیت سبھِ جیِء سم٘ہ٘ہارے 
وہ سمجھتا ہے کہ میرا آقا – خدا سب میں پھیل رہا ہے اور فضل و کرم فراہم کرکے تمام مخلوقات کو برقرار رکھتا ہے

 ਏਕੋ ਏਕੁ ਆਪਿ ਇਕੁ ਏਕੈ ਏਕੈ ਹੈ ਸਗਲਾ ਪਾਸਾਰੇ ॥
ayko ayk aap ik aykai aykai hai saglaa paasaaray.
God Himself is the one and only one and He alone is present in all the expanse.
ਪਰਮਾਤਮਾ ਆਪ ਹੀ ਆਪ ਵੱਸ ਰਿਹਾ ਹੈਇਹ ਸਾਰਾ ਜਗਤ ਉਸ ਇੱਕ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਹੀ ਖਿਲਾਰਾ ਹੈ
 ایکو ایکُ آپِ اِکُ ایکےَ ایکےَ ہےَ سگلا پاسارے 
خود خدا واحد ہے اور وہ تمام وسعت میں تنہا موجود ہے

 ਜਪਿ ਜਪਿ ਹੋਏ ਸਗਲ ਸਾਧ ਜਨ ਏਕੁ ਨਾਮੁ ਧਿਆਇ ਬਹੁਤੁ ਉਧਾਰੇ ॥੩॥
jap jap ho-ay sagal saaDh jan ayk naam Dhi-aa-ay bahut uDhaaray. ||3||
People become true saints by meditating on Naam and they save so many others from the vices. ||3||
 ਨਾਮ ਸਿਮਰ ਸਿਮਰ ਕੇ ਮਨੁੱਖ ਗੁਰਮੁਖਿ ਬਣ ਜਾਂਦੇ ਹਨਇਕ ਨਾਮ ਦਾ ਧਿਆਨ ਧਰ ਕੇ ਉਹ ਅਨੇਕਾਂ ਨੂੰ ਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂ ਬਚਾ ਲੈਂਦੇ ਹਨ 
 جپِ جپِ ہوۓ سگل سادھ جن ایکُ نامُ دھِیاءِ بہُتُ اُدھارے 
لوگ نام پر دھیان دے کر سچے سنت بن جاتے ہیں اور وہ بہت سے دوسرے کو برائیوں سے بچاتے ہیں

 ਗਹਿਰ ਗੰਭੀਰ ਬਿਅੰਤ ਗੁਸਾਈ ਅੰਤੁ ਨਹੀ ਕਿਛੁ ਪਾਰਾਵਾਰੇ ॥
 gahir gambheer bi-ant gusaa-ee ant nahee kichh paaraavaaray.
O’ God, the profound Master of the universe, Your virtues are infinite and the limits of Your creation cannot be found.
ਹੇ ਡੂੰਘੇ ਜਿਗਰੇ ਵਾਲੇ ਬੇਅੰਤ ਗੁਸਾਈਂਤੇਰੇ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਅੰਤ ਨਹੀਂ ਪੈ ਸਕਦਾਤੇਰੀ ਹਸਤੀ ਦਾ ਉਰਲਾ ਤੇ ਪਾਰਲਾ ਬੰਨਾ ਨਹੀਂ ਲੱਭ ਸਕਦਾ
 گہِر گنّبھیِر بِئنّت گُسائیِ انّتُ نہیِ کِچھُ پاراۄارے 
اے خدا ، کائنات کا گہرا مالک ، آپ کی خوبیاں لامحدود ہیں اور آپ کی تخلیق کی حدود نہیں مل سکتی ہیں

 ਤੁਮ੍ਹ੍ਹਰੀ ਕ੍ਰਿਪਾ ਤੇ ਗੁਨ ਗਾਵੈ ਨਾਨਕ ਧਿਆਇ ਧਿਆਇ ਪ੍ਰਭ ਕਉ ਨਮਸਕਾਰੇ ॥੪॥੩੬॥
tumHree kirpaa tay gun gaavai naanak Dhi-aa-ay Dhi-aa-ay parabh ka-o namaskaaray. ||4||36|| 
O’ Nanak, it is only by Your Grace that one sings Your Praises, always meditates on Your Name and humbly bows to You. ||4||36||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਆਖ-) ਜੇਹੜਾ ਭੀ ਕੋਈ ਜੀਵ ਤੇਰੇ ਗੁਣ ਗਾਂਦਾ ਹੈਜੇਹੜਾ ਭੀ ਕੋਈ ਤੇਰਾ ਨਾਮ ਸਿਮਰ ਸਿਮਰ ਕੇ ਤੇਰੇ ਅੱਗੇ ਸਿਰ ਨਿਵਾਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਇਹ ਸਭ ਕੁਝ ਤੇਰੀ ਮੇਹਰ ਨਾਲ ਹੀ ਕਰਦਾ ਹੈ ੩੬ 
 تُم٘ہ٘ہریِ ک٘رِپا تے گُن گاۄےَ نانک دھِیاءِ دھِیاءِ پ٘ربھ کءُ نمسکارے ੩੬
اے نانک ، یہ صرف آپ کے فضل سے ہی آپ کی حمد گاتا ہے ، ہمیشہ آپ کے نام پر غور کرتا ہے اور عاجزی کے ساتھ آپ کو جھکتا ہے

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ॥
aasaa mehlaa 5.
Raag Aasaa, Fifth Guru:
 آسا مہلا  
 ਤੂ ਬਿਅੰਤੁ ਅਵਿਗਤੁ ਅਗੋਚਰੁ ਇਹੁ ਸਭੁ ਤੇਰਾ ਆਕਾਰੁ ॥
too bi-ant avigat agochar ih sabh tayraa aakaar.
O’ God, You are infinite, eternal, and incomprehensible; all this is Your creation.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਤੂੰ ਬੇਅੰਤ ਹੈਂ ਤੂੰ ਅਦ੍ਰਿਸ਼ਟ ਹੈਂਤੂੰ ਗਿਆਨਇੰਦ੍ਰਿਆਂ ਦੀ ਪਹੁੰਚ ਤੋਂ ਪਰੇ ਹੈਂਇਹ ਦਿੱਸਦਾ ਜਗਤ ਸਾਰਾ ਤੇਰਾ ਹੀ ਰਚਿਆ ਹੋਇਆ ਹੈ
 توُ بِئنّتُ اۄِگتُ اگوچرُ اِہُ سبھُ تیرا آکارُ 
اوگت۔ وہ گتی حالت جو بیان ہو سکے بیان سے باہر حالت ۔ لافناہ ۔ اگوچر۔ جو بیان نہ ہو کسے ۔ آکار۔ پسارہ۔ پھیلاؤ۔
۔ اے خدا تو اعداد و شمار سے باہر ہے انسانی سمجھ سے اوپر ہے یہ عالم تیرا ہی پیدا کیا ہوا ہے ۔ 

 ਕਿਆ ਹਮ ਜੰਤ ਕਰਹ ਚਤੁਰਾਈ ਜਾਂ ਸਭੁ ਕਿਛੁ ਤੁਝੈ ਮਝਾਰਿ ॥੧॥
ki-aa ham jant karah chaturaa-ee jaaN sabh kichh tujhai majhaar. ||1||
What cleverness can we, the human beings, exercise when everything happens according to Your will? ||1||
ਅਸੀਂ ਪ੍ਰਾਣੀ ਕੀ ਚਲਾਕੀ ਕਰ ਸਕਦੇ ਹਾਂਜਦ ਸਾਰਾ ਕੁਝ ਤੇਰੇ ਹੁਕਮ ਅੰਦਰ ਹੋ ਰਿਹਾ ਹੈ 
 کِیا ہم جنّت کرہ چتُرائیِ جاں سبھُ کِچھُ تُجھےَ مجھارِ 
جنت جاندار ۔ چترائی ۔ چالاکی ۔ تھے مجھار۔ تیرے علم مین زیر فرمان ہے ۔ مجھار۔ اندر
تیرا پیدا کردہ انسان تیرے ساہمنے اپنی کونسی دانائی کرسکتا ہے اس عالم میں جو کچھ ہو رہا ہے تیرے فرمان سے ہو رہا ہے ۔ (
1)
۔

 ਮੇਰੇ ਸਤਿਗੁਰ ਅਪਨੇ ਬਾਲਿਕ ਰਾਖਹੁ ਲੀਲਾ ਧਾਰਿ ॥
mayray satgur apnay baalik raakho leelaa Dhaar.
O’ my true Guru, showing Your power, protect Your children from the vices.
ਹੇ ਮੇਰੇ ਸਤਿਗੁਰਆਪਣੇ ਬੱਚਿਆਂ ਨੂੰ ਆਪਣਾ ਕੌਤਕ ਵਰਤਾ ਕੇ (ਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂਬਚਾਈ ਰੱਖ
 میرے ستِگُر اپنے بالِک راکھہُ لیِلا دھارِ 
(
1)لیلا ۔ کھیل ۔ دھار اپنا کے سمت اچھی نیک سمجھ و عقل ٹھاکر آقا۔ مالک۔
میرے سچے مرشد۔ بچہ سمجھ کر میری حفاظت کیجئے

 ਦੇਹੁ ਸੁਮਤਿ ਸਦਾ ਗੁਣ ਗਾਵਾ ਮੇਰੇ ਠਾਕੁਰ ਅਗਮ ਅਪਾਰ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
dayh sumat sadaa gun gaavaa mayray thaakur agam apaar. ||1|| rahaa-o.
O’ my incomprehensible and infinite Master-God, please bless me with the wisdom that I may always sing Your Praises. ||1||Pause||
ਹੇ ਮੇਰੇ ਅਪਹੁੰਚ ਤੇ ਬੇਅੰਤ ਠਾਕੁਰਮੈਨੂੰ ਸੁਚੱਜੀ ਮਤਿ ਦੇਹ ਮੈਂ ਸਦਾ ਤੇਰੇ ਗੁਣ ਗਾਂਦਾ ਰਹਾਂ  ਰਹਾਉ 
 دیہُ سُمتِ سدا گُنھ گاۄا میرے ٹھاکُر اگم اپار  رہاءُ 
اگم ۔ اسنانی رسائی سے بلند ۔ اپار۔ لا محدود۔ جس کا کوئی حدیا بن نہ ہو۔ رہاؤ ۔(
1)
اور دانشمندی عطا کرتا کہ ہمیشہ تیری حمد وثناہ کرتا رہوں۔(1) رہاؤ۔

 ਜੈਸੇ ਜਨਨਿ ਜਠਰ ਮਹਿ ਪ੍ਰਾਨੀ ਓਹੁ ਰਹਤਾ ਨਾਮ ਅਧਾਰਿ ॥
jaisay janan jathar meh paraanee oh rahtaa naam aDhaar.
O’ God, it is Your wondrous play that a creature in the mother’s womb survives by the support of Naam.
(ਹੇ ਠਾਕੁਰਇਹ ਤੇਰਾ ਹੀ ਚੋਜ ਹੈ ਜਿਵੇਂਜੀਵ ਮਾਂ ਦੇ ਪੇਟ ਵਿਚ ਰਹਿੰਦਾ ਹੋਇਆ ਤੇਰੇ ਨਾਮ ਦੇ ਆਸਰੇ ਜੀਊਂਦਾ ਹੈ
 جیَسے جننِ جٹھر مہِ پ٘رانیِ اوہُ رہتا نام ادھارِ 
جیسے جنن جھڑمنہ پرانی ۔ جیسے مان کے پیٹ کی آگ میں بچہ رہتا ہے ۔ نام ادھار۔ نام کے سمیارے زندہ ہے ۔
جیسے ماتا کے پیٹ کی آگ میں بچہ نام کے سہارے جیتا ہے ۔ 

 ਅਨਦੁ ਕਰੈ ਸਾਸਿ ਸਾਸਿ ਸਮ੍ਹ੍ਹਾਰੈ ਨਾ ਪੋਹੈ ਅਗਨਾਰਿ ॥੨॥
anad karai saas saas samHaarai naa pohai agnaar. ||2||
He remembers You with each and every breath and enjoys bliss because the fire of womb cannot reach him. ||2||
ਉਹ ਹਰੇਕ ਸਾਹ ਨਾਲ ਤੇਰਾ ਨਾਮ ਯਾਦ ਕਰਦਾ ਹੈ ਤੇ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦਾ ਹੈ ਉਸ ਨੂੰ ਪੇਟ ਦੀ ਅੱਗ ਸੇਕ ਨਹੀਂ ਅਪੜਾ ਸਕਦੀ 
 اندُ کرےَ ساسِ ساسِ سم٘ہ٘ہارےَ نا پوہےَ اگنارِ 
ساس ساس ہمارے ۔ سانس ۔ سانس یاد کرتا ہے ۔ سنبھالتا ہے ۔ نہ پوہے اکنار۔ آگ اس پر اثر اندا ز نہیں ہوتی ۔ (
2)
وہ ہر سانس خدا کو یاد کرتا ہے جس سے پیٹ کی آگ اس پر اثر انداز نہیں ہوتی ۔ (2)

 ਪਰ ਧਨ ਪਰ ਦਾਰਾ ਪਰ ਨਿੰਦਾ ਇਨ ਸਿਉ ਪ੍ਰੀਤਿ ਨਿਵਾਰਿ ॥
par Dhan par daaraa par nindaa in si-o pareet nivaar.
O’ God, please save me from the love of others’ wealth, woman, and slander.
ਹੇ ਠਾਕੁਰਪਰਾਇਆ ਧਨਪਰਾਈ ਇਸਤ੍ਰੀਪਰਾਈ ਨਿੰਦਾਇਹਨਾਂ ਵਿਕਾਰਾਂ ਨਾਲੋਂ ਮੇਰੀ ਪ੍ਰੀਤਿ ਦੂਰ ਕਰ
 پر دھن پر دارا پر نِنّدا اِن سِءُ پ٘ریِتِ نِۄارِ 
پردھن۔ بیگانی دولت۔ پروارا پرائی عورت۔ پریت نوار۔ پیار چھوڑ ۔
بیگانی دؤلت بیگانی عورت۔ دوسروں کی بد گوئی ان سے میرا پیار مٹا خدا یئیا ۔ 

 ਚਰਨ ਕਮਲ ਸੇਵੀ ਰਿਦ ਅੰਤਰਿ ਗੁਰ ਪੂਰੇ ਕੈ ਆਧਾਰਿ ॥੩॥
charan kamal sayvee rid antar gur pooray kai aaDhaar. ||3||
Bless me so that through the support of the perfect Guru, I may enshrine Your immaculate Name in my heart and keep meditating on it. ||3||
(ਮੇਹਰ ਕਰਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਦਾ ਆਸਰਾ ਲੈ ਕੇ ਮੈਂ ਤੇਰੇ ਸੋਹਣੇ ਚਰਨਾਂ ਦਾ ਧਿਆਨ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਟਿਕਾਈ ਰੱਖਾਂ 
 چرن کمل سیۄیِ رِد انّترِ گُر پوُرے کےَ آدھارِ 
گرپورے کے آدھار ۔ کامل مرشد کے آسرے ۔ ـ
(3)
کامل مرشد کے سہارے خدا کو دل میں بساؤ۔ (3)

 ਗ੍ਰਿਹੁ ਮੰਦਰ ਮਹਲਾ ਜੋ ਦੀਸਹਿ ਨਾ ਕੋਈ ਸੰਗਾਰਿ ॥
garihu mandar mehlaa jo deeseh naa ko-ee sangaar.
O’ my friends, all these houses, mansions and palaces which you see, none of these would accompany you in the end.
ਹੇ ਭਾਈ!) ਘਰ ਮੰਦਰ ਮਹਲਮਾੜੀਆਂ ਜੇਹੜੇ ਭੀ ਤੈਨੂੰ ਦਿੱਸ ਰਹੇ ਹਨ ਇਹਨਾਂ ਵਿਚੋਂ ਕੋਈ ਭੀ ਤੇਰੇ ਨਾਲ (ਅੰਤ ਵੇਲੇਨਹੀਂ ਜਾਇਗਾ
 گ٘رِہُ منّدر مہلا جو دیِسہِ نا کوئیِ سنّگارِ 
گریہہ۔ گھر مندر۔ مکان محلا محلات ۔ سنگار۔ ساتھی
۔ یہ گھر مکانات و محلات جو بھی دکھائی دے رہے ہیں۔ کوئی ساتھی نہیں۔ 

 ਜਬ ਲਗੁ ਜੀਵਹਿ ਕਲੀ ਕਾਲ ਮਹਿ ਜਨ ਨਾਨਕ ਨਾਮੁ ਸਮ੍ਹ੍ਹਾਰਿ ॥੪॥੩੭॥
jab lag jeeveh kalee kaal meh jan naanak naam samHaar. ||4||37||
O’ Nanak, as long as you live in this world, enshrine God’s Name in Your heart. ||4||37||
ਹੇ ਦਾਸ ਨਾਨਕਜਦ ਤਕ ਤੂੰ ਜਗਤ ਵਿਚ ਜੀਊਂਦਾ ਹੈਂ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਪ੍ਰੋ ਰੱਖ ੩੭ 
 جب لگُ جیِۄہِ کلیِ کال مہِ جن نانک نامُ سم٘ہارِ ੩੭ 
کلی کال۔ عالم میں۔ نام سمار۔ نام یعنی سچ یاد رکھ ۔
اے خادم نانک جب تک اس دروزماں میں زندہ ہے سچ اور حقیقت نام خدا دل میں بساؤ۔

 ਆਸਾ ਘਰੁ ੩ ਮਹਲਾ ੫ 
aasaa ghar 3 mehlaa 5
Raag Aasaa, Third Beat, Fifth Guru:
 آسا گھرُ  مہلا 
 ੴ ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ ॥
ik-oNkaar satgur parsaad.
One eternal God. realized by the grace of the true Guru:
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
  ستِگُر پ٘رسادِ 
ایک ابدی خدا۔ سچے گرو کے فضل سے احساس ہوا

 ਰਾਜ ਮਿਲਕ ਜੋਬਨ ਗ੍ਰਿਹ ਸੋਭਾ ਰੂਪਵੰਤੁ ਜੋੁਆਨੀ ॥
raaj milak joban garih sobhaa roopvant jo-aanee.
Power, property, youth, home, fame and the beauty of youth;
(
ਹੇ ਭਾਈ!) ਹਕੂਮਤਿਜ਼ਮੀਨ ਦੀ ਮਾਲਕੀਜੋਬਨਘਰਇੱਜ਼ਤਸੁੰਦਰਤਾਜੁਆਨੀ,
 راج مِلک جوبن گ٘رِہ سوبھا روُپۄنّتُ جدیانیِ 
راج۔ حکومت۔ ملک جائیداد ۔ گریہہ۔ گھر ۔ سوبھا۔ شہرت۔ روپونت۔ خوبصورتی ۔ جوانی جوانی
حکومت و جائیداد اور جوانی گھر بار اور خوبصورتی 

 ਬਹੁਤੁ ਦਰਬੁ ਹਸਤੀ ਅਰੁ ਘੋੜੇ ਲਾਲ ਲਾਖ ਬੈ ਆਨੀ ॥
bahut darab hastee ar ghorhay laal laakh bai aanee.
abundant wealth, elephants, horses and very expensive jewels,
ਬਹੁਤ ਧਨਹਾਥੀ ਅਤੇ ਘੋੜੇ (ਜੇ ਇਹ ਸਭ ਕੁਝ ਕਿਸੇ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਪਾਸ ਹੋਵੇ), ਜੇ ਲੱਖਾਂ ਰੁਪਏ ਖ਼ਰਚ ਕੇ ਕੀਮਤੀ ਲਾਲ ਮੁੱਲ ਲੈ ਆਵੇ 
 بہُتُ دربُ ہستیِ ارُ گھوڑے لال لاکھ بےَ آنیِ 
دربھ ۔ سرمایہ ۔ ہستی ۔ ہاتھی ۔ بیعہ ۔ قیمت سے خریدنا۔
بھاری سرمایہ ہاتھی اور گھوڑے اور قیمتی لعل خریدے ہوئے ۔

 ਆਗੈ ਦਰਗਹਿ ਕਾਮਿ ਨ ਆਵੈ ਛੋਡਿ ਚਲੈ ਅਭਿਮਾਨੀ ॥੧॥
aagai dargahi kaam na aavai chhod chalai abhimaanee. ||1||
none of these shall be of any use in God’s court. The egoistic man departs from the world leaving all these things behind.||1||
ਅਗਾਂਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਦਰਗਾਹ ਵਿਚ ਇਹਨਾਂ ਵਿਚੋਂ ਕੋਈ ਭੀ ਚੀਜ਼ ਕੰਮ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦੀ ਇਹਨਾਂ ਪਦਾਰਥਾਂ ਦਾ ਮਾਣ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਮਨੁੱਖ ਇਹਨਾਂ ਸਭਨਾਂ ਨੂੰ ਇਥੇ ਹੀ ਛੱਡ ਕੇ ਇਥੋਂ ਤੁਰ ਪੈਂਦਾ ਹੈ  
 آگےَ درگہِ کامِ ن آۄےَ چھوڈِ چلےَ ابھِمانیِ 
آگے درگیہہ۔ آئندہ دربار الہٰی۔ ابھیمانی ۔ مفرور
خدا کے دربار نہیں کام کسی بھی مغرور انسان چھورجاتا ہے نہیں۔(
1)

 ਕਾਹੇ ਏਕ ਬਿਨਾ ਚਿਤੁ ਲਾਈਐ ॥
kaahay ayk binaa chit laa-ee-ai.
Why should we attach our mind to anything other than God?
ਇਕ ਪਰਮਾਤਮਾ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਕਿਸੇ ਹੋਰ ਵਿਚ ਪ੍ਰੀਤਿ ਨਹੀਂ ਜੋੜਨੀ ਚਾਹੀਦੀ
 کاہے ایک بِنا چِتُ لائیِئےَ 
(
1)کا ہے ۔ کیوں ۔
واحدخدا کے بغیر کسی دوسرے سے نہیں چاہیے پیار۔

 ਊਠਤ ਬੈਠਤ ਸੋਵਤ ਜਾਗਤ ਸਦਾ ਸਦਾ ਹਰਿ ਧਿਆਈਐ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
oothat baithat sovat jaagat sadaa sadaa har Dhi-aa-ee-ai. ||1|| rahaa-o.
Instead, while sitting, standing, sleeping or awake, we should always meditate on God with love and devotion. ||1||Pause||
ਉਠਦਿਆਂ ਬੈਠਦਿਆਂ ਸੁੱਤਿਆਂ ਜਾਗਦਿਆਂ ਸਦਾ ਹੀ ਸਦਾ ਹੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਵਿਚ ਹੀ ਸੁਰਤਿ ਜੋੜੀ ਰੱਖਣੀ ਚਾਹੀਦੀ ਹੈ  ਰਹਾਉ 
 اوُٹھت بیَٹھت سوۄت جاگت سدا سدا ہرِ دھِیائیِئےَ  رہاءُ 
ہر دھیائے ۔ خدا کو یاد رکھو (
1)رہاؤ
اُٹھتے بیٹھتے سوتے جاگتے ہمیشہ چاہیئے یاد خاد ۔ (1)رہاؤ۔

 ਮਹਾ ਬਚਿਤ੍ਰ ਸੁੰਦਰ ਆਖਾੜੇ ਰਣ ਮਹਿ ਜਿਤੇ  ਪਵਾੜੇ ॥
mahaa bachitar sundar aakhaarhay ran meh jitay pavaarhay.
One may win great contests or fights in the utmost beautiful arenas.
ਕੋਈ ਮਨੁੱਖ ਬੜੇ ਅਸਚਰਜ ਸੋਹਣੇ ਪਿੜ (ਕੁਸ਼ਤੀਆਂਜਿੱਤਦਾ ਹੈ ਜੇ ਉਹ ਰਣਭੂਮੀ ਵਿਚ ਜਾ ਕੇ ਬੜੇ ਬੜੇ ਝਗੜੇਲੜਾਈਆਂ ਜਿੱਤ ਲੈਂਦਾ ਹੈ,
 مہا بچِت٘ر سُنّدر آکھاڑے رنھ مہِ جِتے پۄاڑے 
بچتر۔ حیران کرنے والے ۔ سندر۔ خوبصورت ۔ اکھاڑے ۔ میدان ۔ پواڑے ۔ جھگڑے ۔ ہوں میں ۔
اگر کوئی حیران کرنے والے اکھاڑے ۔ اور کشیاں لیتا ہے جیت اور میدان جنگ جیت لیتا ہے