Urdu-Page-377

 ਪੂਰਾ ਗੁਰੁ ਪੂਰੀ ਬਣਤ ਬਣਾਈ ॥
pooraa gur pooree banat banaa-ee.
God is perfect and He has fashioned a perfect creation.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਸਭ ਤੋਂ ਵੱਡਾ ਹੈ ਉਸ ਵਿਚ ਕੋਈ ਉਕਾਈ ਨਹੀਂ ਹੈ ਉਸ ਦੀ ਬਣਾਈ ਹੋਈ ਰਚਨਾ ਭੀ ਉਕਾਈਹੀਣ ਹੈ
 پوُرا گُرُ پوُریِ بنھت بنھائیِ  
خدا کامل ہے اور اس نے ایک کامل تخلیق کی تشکیل کی ہے

 ਨਾਨਕ ਭਗਤ ਮਿਲੀ ਵਡਿਆਈ ॥੪॥੨੪॥
naanak bhagat milee vadi-aa-ee. ||4||24||
O’ Nanak, His devotees receive honor here and hereafter. ||4||24||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਭਗਤੀ ਕਰਨ ਵਾਲਿਆਂ ਨੂੰ ਲੋਕ ਪਰਲੋਕ ਵਿਚਆਦਰ ਮਿਲਦਾ ਹੈ ੨੪ 
 نانک بھگت مِلیِ ۄڈِیائیِ ੨੪
بھگت۔ عاشقان الہٰی ۔ وڈیائی ۔ عزت و حشمت عظمت
اے نانک خدا سے محبت کرنے والوں وعظمت ، عزت وحشمت حاصل ہوتی ہے ۔ 

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ॥
aasaa mehlaa 5.
Raag Aasaa, Fifth Guru:
 آسا مہلا   
 ਗੁਰ ਕੈ ਸਬਦਿ ਬਨਾਵਹੁ ਇਹੁ ਮਨੁ ॥
gur kai sabad banaavahu ih man.
By attuning to the Guru’s word, mold your mind ready to meditate on Naam.
 
(ਹੇ ਭਾਈ!) ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਵਿਚ ਜੁੜ ਕੇ (ਆਪਣੇਇਸ ਮਨ ਨੂੰ ਨਵੇਂ ਸਿਰੇ ਘੜੋ 
 گُر کےَ سبدِ بناۄہُ اِہُ منُ  
بناوہو۔ بناو۔ گر کے سبد۔ کلام مرشد۔ ایہہ من اس دل کو ۔
اے دل کلام مرشد سے اایسا دل بناؤ اور منصوبہ تیار کرؤ۔ 

 ਗੁਰ ਕਾ ਦਰਸਨੁ ਸੰਚਹੁ ਹਰਿ ਧਨੁ ॥੧॥
gur kaa darsan sanchahu har Dhan. ||1||
By focusing on the Guru’s word, accumulate the wealth of God’s Name. ||1||
 
ਗੁਰੂ ਦਾ ਸ਼ਬਦ ਹੀ ਗੁਰੂ ਦਾ ਦੀਦਾਰ ਹੈ ਇਸ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮਧਨ ਇਕੱਠਾ ਕਰੋ 
 گُر کا درسنُ سنّچہُ ہرِ دھنُ  
سنچہو۔ ہر دھن۔ الہٰی دولت اکھٹی کرؤ۔
دیدار مرشد سےا لہٰی نام کی دؤلت اکھٹی کیجئے(
1)

 ਊਤਮ ਮਤਿ ਮੇਰੈ ਰਿਦੈ ਤੂੰ ਆਉ ॥
 ootam mat mayrai ridai tooN aa-o.
 O’ sublime intellect, come enter into my mind,
 
ਹੇ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਮਤਿ! (ਜੇ ਗੁਰੂ ਮੇਹਰ ਕਰੇ ਤਾਂਤੂੰ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ  ਵੱਸ,
 اوُتم متِ میرےَ رِدےَ توُنّ آءُ  
اتم اونچی ۔ مت عقل سمجھ۔ ردے ۔ دل ۔قلب ۔
اے بلند عقل تو میرے دل میں بس

 ਧਿਆਵਉ ਗਾਵਉ ਗੁਣ ਗੋਵਿੰਦਾ ਅਤਿ ਪ੍ਰੀਤਮ ਮੋਹਿ ਲਾਗੈ ਨਾਉ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
Dhi-aava-o gaava-o gun govindaa at pareetam mohi laagai naa-o. ||1|| rahaa-o.
so that God’s Name becomes most dear to me and I may meditate upon God and sing His praises ||1||Pause||
 
ਤਾ ਕਿ ਮੈਂ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣ ਗਾਵਾਂ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਧਿਆਨ ਧਰਾਂ ਤੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਮੈਨੂੰ ਬਹੁਤ ਪਿਆਰਾ ਲੱਗ ਪਏ  ਰਹਾਉ 
 دھِیاۄءُ گاۄءُ گُنھ گوۄِنّدا اتِ پ٘ریِتم موہِ لاگےَ ناءُ  رہاءُ  
گن گوبند۔ الہٰی صفت۔ صلاح ۔ ات نہایت۔ پریتم پیارا۔ (
1)رہاؤ۔
تاکہ میں الہٰی حمدوثناہ کروں کدا کی توضیف کرؤ ں اور مجھے الہٰی نام یعنی سچ اور حقیقت سے میرا نہایت زیادہ محبت ہو جائے (1)رہاؤ۔

 ਤ੍ਰਿਪਤਿ ਅਘਾਵਨੁ ਸਾਚੈ ਨਾਇ ॥
taripat aghaavan saachai naa-ay.
Attuning to God’s Name, the worldly desires end and the mind becomes satiated.
 
ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਵਿਚ ਜੁੜਿਆਂ ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਮੁੱਕ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਮਨ ਰੱਜ ਜਾਂਦਾ ਹੈ l 
 ت٘رِپتِ اگھاۄنُ ساچےَ ناءِ  
ترپت۔ پورا ہونا خواہشات باقی نہ رہنا۔ ساچے ناوں سچے سچ سے ۔
سچ اور حقیقت یعنی نام الہٰی سے تسلی و تسکین ملتی ہے ۔ 

 ਅਠਸਠਿ ਮਜਨੁ ਸੰਤ ਧੂਰਾਇ ॥੨॥
athsath majan sant Dhooraa-ay. ||2||
The Guru’s teaching is the ablution at all the sacred shrines. ||2||
 
ਗੁਰੂ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਦੀ ਧੂੜ ਅਠਾਹਠ ਤੀਰਥਾਂ ਦਾ ਇਸ਼ਨਾਨ ਹੈ 
 اٹھسٹھِ مجنُ سنّت دھوُراءِ  
اٹھ سٹھمجن۔ اٹھاہت۔ اڑسٹھ زیار گاہوں کی زیارت سنت دہوارئے ۔ کان پائے پاکدامن عارف۔
دہول پائے پاکدامن اڑسٹھ زیار گاہوں کی زیار ہے ۔ (
2)

 ਸਭ ਮਹਿ ਜਾਨਉ ਕਰਤਾ ਏਕ ॥
sabh meh jaan-o kartaa ayk.
I deem the one Creator pervading in all.
 
ਮੈਂ ਹੁਣ ਸਭਨਾਂ ਵਿਚ ਇਕ ਕਰਤਾਰ ਨੂੰ ਹੀ ਵੱਸਦਾ ਪਛਾਣਦਾ ਹਾਂ
 سبھ مہِ جانءُ کرتا ایک  
(
2) کرتا۔ کرتار۔ کارساز۔ عالم پیدا کرنے والا۔
یہ سمجھو کہ سب مینہہ خدا بستا ہے 

 ਸਾਧਸੰਗਤਿ ਮਿਲਿ ਬੁਧਿ ਬਿਬੇਕ ॥੩॥
 saaDhsangat mil buDh bibayk. ||3||
By joining the companyof saintly persons I have acquired discerning wisdom. |3|
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ ਮਿਲ ਕੇ ਮੈਂ ਚੰਗੇ ਮੰਦੇ ਦੀ ਪਰਖ ਕਰਨ ਵਾਲੀ ਅਕਲ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰ ਲਈ ਹੈ  
 سادھسنّگتِ مِلِ بُدھِ بِبیک  
سادھ۔ سنگت۔ صحبت پاکدمناں ۔ بدھ بیک وویک۔ نتیجہ اخذ کرنے والی سمجھ
اور پاکدامنوں کی صحبت سے عقل سیلم ملتی ہے (
3)۔

 ਦਾਸੁ ਸਗਲ ਕਾ ਛੋਡਿ ਅਭਿਮਾਨੁ ॥
daas sagal kaa chhod abhimaan.
Abandoning all ego I consider myself as the servant of all.
 
ਮੈਂ ਅਹੰਕਾਰ ਛੱਡ ਕੇ ਸਭਨਾਂ ਦਾ ਦਾਸ ਬਣ ਗਿਆ ਹਾਂ
 داسُ سگل کا چھوڈِ ابھِمانُ  
(
3) داس۔ سگل ۔ سب کا ۔ ابھیمان ۔ تکبر ۔ غرور ہے ۔ اس سے عذاب
سبھ کا کادم ہو جاؤ غرور چھوڑ و

 ਨਾਨਕ ਕਉ ਗੁਰਿ ਦੀਨੋ ਦਾਨੁ ॥੪॥੨੫॥
naanak ka-o gur deeno daan. ||4||25||
The Guru has granted this gift to Nanak. ||4||25||
 
(ਮੈਨੂੰਨਾਨਕ ਨੂੰ ਗੁਰੂ ਨੇ (ਬਿਬੇਕ ਬੁਧਿ ਦੀ ਅਜੇਹੀਦਾਤਿ ਬਖ਼ਸ਼ੀ ਹੈ ੨੫
 نانک کءُ گُرِ دیِنو دانُ ੨੫
نانک کو یہ سبق عنایت کیا ہے ۔ (
4)

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ॥
aasaa mehlaa 5.
Raag Aasaa, Fifth Guru:
 آسا مہلا   
 ਬੁਧਿ ਪ੍ਰਗਾਸ ਭਈ ਮਤਿ ਪੂਰੀ ॥
buDh pargaas bha-ee mat pooree.
My mind has been enlightened and my intellect has become perfect,
 
ਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮੇਰੀ ਬੁੱਧੀ ਵਿਚ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦਾ ਚਾਨਣ ਹੋ ਗਿਆ ਹੈ ਮੇਰੀ ਅਕਲ ਉਕਾਈਹੀਣ ਹੋ ਗਈ ਹੈ,
 بُدھِ پ٘رگاس بھئیِ متِ پوُریِ  
بدھ ۔سجھ ۔ عقل ۔ بھیئی ۔ ہوئی ۔ پوری ۔ مکمل۔
ذہن روشن ہو گیا۔ جس سے سمجھ مکمل ہو گئی 

 ਤਾ ਤੇ ਬਿਨਸੀ ਦੁਰਮਤਿ ਦੂਰੀ ॥੧॥
taa tay binsee durmat dooree. ||1||
because of that, my evil intellect and distance from God has been destroyed.|1|
 
ਇਸ ਦੀ ਸਹਾਇਤਾ ਨਾਲ ਮੇਰੀ ਭੈੜੀ ਮਤਿ ਦਾ ਨਾਸ ਹੋ ਗਿਆ ਹੈਮੇਰੀ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨਾਲੋਂ ਵਿੱਥ ਮਿਟ ਗਈ ਹੈ 
 تا تے بِنسیِ دُرمتِ دوُریِ  
تاتے اس سے ونسی ۔ مٹی درمت ۔ بد عقلی ۔ دوری ۔ فاصلہ ۔ (
1)
جس سے جہالت مٹ گئی اور الہٰی قربت حاصل ہوئی اور دوری مٹ گئی (1)

 ਐਸੀ ਗੁਰਮਤਿ ਪਾਈਅਲੇ ॥
 aisee gurmat paa-ee-alay.
 Such are the teachings which I have received from the Guru;
 
ਮੈਂ ਗੁਰੂ ਪਾਸੋਂ ਅਜੇਹੀ ਮਤਿ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰ ਲਈ ਹੈ,
 ایَسیِ گُرمتِ پائیِئلے  
گرمت۔ سبق مرشد۔ واعظ مرشد۔
مرشد سے ایسا واعظ نامہ۔ سبق ملا ہے

 ਬੂਡਤ ਘੋਰ ਅੰਧ ਕੂਪ ਮਹਿ ਨਿਕਸਿਓ ਮੇਰੇ ਭਾਈ ਰੇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
boodat ghor anDh koop meh niksi-o mayray bhaa-ee ray. ||1|| rahaa-o.
O’ my brother, with the help of that I have escaped from drowning in the pitch dark well of worldly attachments. |1| ll Pause ll
ਜਿਸ ਦੀ ਸਹਾਇਤਾ ਨਾਲ ਹੇ ਮੇਰੇ ਵੀਰਮੈਂ ਮਾਇਆ ਦੇ ਘੁੱਪ ਹਨੇਰੇ ਖੂਹ ਵਿਚੋਂ ਡੁਬਦਾ ਡੁਬਦਾ ਬਚ ਨਿਕਲਿਆ ਹਾਂ  ਰਹਾਉ 
 بوُڈت گھور انّدھ کوُپ مہِ نِکسِئو میرے بھائیِ رے  رہاءُ  
بوڈھت۔ ڈوبتا ہوا۔ گھورا اندھ ۔ بھاری اندھیرے ۔ کوپ ۔ کونیں ۔ میہہ۔ سےانکسیؤ ۔ نکلا۔(
1) رہاؤ۔
جس سے میں نہایت اندھیرے کو ئیں سے ڈوبتاڈوتابچ گیا ۔ رہاؤ

 ਮਹਾ ਅਗਾਹ ਅਗਨਿ ਕਾ ਸਾਗਰੁ ॥
 mahaa agaah agan kaa saagar.
 
this world is like an unfathomable sea of fire of worldly desires,
 
ਇਹ ਸੰਸਾਰ ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਦੀ ਅੱਗ ਦਾ ਇਕ ਬੜਾ ਅਥਾਹ ਸਮੁੰਦਰ ਹੈ,
 مہا اگاہ اگنِ کا ساگرُ  
مہاں ۔ اگاہ۔ اتنا زیادہ گہرا جس کا اندازہ نہ ہو سکے ۔ آگن۔ آگ ساگر۔ سمندر۔
نہات گہرا۔ آگ کا سمندر جس کی گہرائی کا اندازہ نہ ہو سکے ۔ (
2)

 ਗੁਰੁ ਬੋਹਿਥੁ ਤਾਰੇ ਰਤਨਾਗਰੁ ॥੨॥
 gur bohith taaray ratnaagar. ||2||
 The Guru, the treasure of divine wisdom, is like a ship which ferries us across this terrible ocean. ||2||
 
ਰਤਨਾਂ ਦੀ ਖਾਣ ਗੁਰੂ (ਮਾਨੋਜਹਾਜ਼ ਹੈ ਜੋ (ਇਸ ਸਮੁੰਦਰ ਵਿਚੋਂਪਾਰ ਲੰਘਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ  
 گُرُ بوہِتھُ تارے رتناگرُ  
بوہتھ۔ جہاز۔ رتنا گر۔ ہیروں کی کان ۔ (
2)
ہیرون کی کان مرشد جو ایک جہاز کی مانند ہے ۔ عبور کراتا ہے 

 ਦੁਤਰ ਅੰਧ ਬਿਖਮ ਇਹ ਮਾਇਆ ॥
dutar anDh bikham ih maa-i-aa.
Maya is like a dark and treacherous ocean which is difficult to cross.
 
ਇਹ ਮਾਇਆ (ਮਾਨੋਇਕ ਸਮੁੰਦਰ ਹੈ ਜਿਸ ਵਿਚੋਂਪਾਰ ਲੰਘਣਾ ਔਖਾ ਹੈ ਜਿਸ ਵਿਚ ਘੁੱਪ ਹਨੇਰਾ ਹੀ ਹਨੇਰਾ ਹੈ 
 دُتر انّدھ بِکھم اِہ مائِیا  
وتر۔ ناقابل عبور ۔ دکھم۔ سخت دشوار۔
یہ دنیاوی دولت ایک سمندر کی مانند ہے ۔ جہاں مایوسی اور اندھیرا ہے ۔ جسے عبور کرنا محال ہے ۔ 

 ਗੁਰਿ ਪੂਰੈ ਪਰਗਟੁ ਮਾਰਗੁ ਦਿਖਾਇਆ ॥੩॥
gur poorai pargat maarag dikhaa-i-aa. ||3||
The Perfect Guru has revealed the way to cross over it. ||3||
 
ਇਸ ਨੂੰ ਪਾਰ ਕਰਨ ਲਈ ਪੂਰਨ ਗੁਰਾਂ ਨੇ ਰਸਤਾ ਪਰਤੱਖ ਤੌਰ ਤੇ ਵਿਖਾਲ ਦਿੱਤਾ ਹੈ 
 گُرِ پوُرےَ پرگٹُ مارگُ دِکھائِیا  
پرگٹ مارگ۔ روشن ۔ راستہ ۔ صراط مستقیم
اب کامل مرشد نے اسے عبور کرنے کے لئے صراط مستقیم جو روش ن ہے دکھایا ہے ۔ (
3)

 ਜਾਪ ਤਾਪ ਕਛੁ ਉਕਤਿ ਨ ਮੋਰੀ ॥
jaap taap kachh ukat na moree.
I don’t have the merit of worship, penance, or any wisdom.
 
ਮੇਰੇ ਪਾਸ ਕੋਈ ਜਪ ਨਹੀਂ ਕੋਈ ਤਪ ਨਹੀਂ ਕੋਈ ਸਿਆਣਪ ਨਹੀਂ,
 جاپ تاپ کچھُ اُکتِ ن موریِ  
(
3)جاپ تاپ عبادت و ریاضت ۔ اکت۔ دلیل
نہ میر ی کوئی عبادت و ریاضت نہ کوئی دلیل یا دانمشندی ۔ 

 ਗੁਰ ਨਾਨਕ ਸਰਣਾਗਤਿ ਤੋਰੀ ॥੪॥੨੬॥
gur naanak sarnaagat toree. ||4||26||
 
Nanak says, O’ Guru I have come to Your refuge.||4||26||
 
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਆਖ-) ਹੇ ਗੁਰੂਮੈਂ ਤਾਂ ਤੇਰੀ ਹੀ ਸਰਨ ਆਇਆ ਹਾਂ ੨੬
 گُر نانک سرنھاگتِ توریِ ੨੬ 
اے مرشد نانک۔ مجھے تو صرف تیری پناہ ہے

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ਤਿਪਦੇ ੨ ॥
aasaa mehlaa 5 tipday 2.
Raag Aasaa,Ti-Padas 2. Fifth Guru:
 آسا مہلا  تِپدے   
 ਹਰਿ ਰਸੁ ਪੀਵਤ ਸਦ ਹੀ ਰਾਤਾ ॥
har ras peevat sad hee raataa.
One who partakes the elixir of God’s Name always remains imbued with Naam,
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮਅੰਮ੍ਰਿਤ ਪੀਣ ਵਾਲਾ ਮਨੁੱਖ (ਨਾਮਰੰਗ ਵਿਚਸਦਾ ਹੀ ਰੰਗਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ,
 ہرِ رسُ پیِۄت سد ہیِ راتا  
ہر رس پیوت۔ الہٰی لطف اُٹھا کر۔ صد ہمیشہ ۔ راتا ۔ محو مجذوب ۔
الہٰی نام کا لطف انسان کےد ل میں صدیوی بستا ہے ۔

 ਆਨ ਰਸਾ ਖਿਨ ਮਹਿ ਲਹਿ ਜਾਤਾ ॥
aan rasaa khin meh leh jaataa.
while the effect of other worldly relishes wear off in an instant.
 
ਹੋਰ ਹੋਰ ਰਸਾਂ ਦਾ (ਦੁਨੀਆ ਦੇ ਪਦਾਰਥਾਂ ਦਾਅਸਰ ਇਕ ਖਿਨ ਵਿਚ ਉਤਰ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 آن رسا کھِن مہِ لہِ جاتا  
آن رسا۔ دوسرے لطف۔ کھن جلدی ۔ لیہہ جاتا مٹ جاتے ہیں۔
دوسرے مزے جلدی ختم ہو جاتے ہیں۔

 ਹਰਿ ਰਸ ਕੇ ਮਾਤੇ ਮਨਿ ਸਦਾ ਅਨੰਦ ॥
har ras kay maatay man sadaa anand.
Imbued with the essence of God’s Name, the mind is forever in bliss.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮਰਸ ਦੇ ਮਤਵਾਲੇ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਸਦਾ ਆਨੰਦ ਟਿਕਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ,
 ہرِ رسُ کے ماتے منِ سدا اننّد  
ہر رس مانے ۔ الہٰی لطف میں محو و مجذوب ۔ سدا ۔ انند۔ ہمیشہ خوشی اور صابرئیت ۔
۔ الہٰی عشق میں محو ومجذوب اور اس پیار کا لطف لینے والا ہمیشہ خوشی اور صابرئیت رہتا ہے

 ਆਨ ਰਸਾ ਮਹਿ ਵਿਆਪੈ ਚਿੰਦ ॥੧॥
aan rasaa meh vi-aapai chind. ||1||
Anxiety befalls by indulging in the taste of worldly relishes. ||1||
 
ਪਰ ਦੁਨੀਆ ਦੇ ਪਦਾਰਥਾਂ ਦੇ ਸਵਾਦਾਂ ਵਿਚ ਪਿਆਂ ਚਿੰਤਾ  ਦਬਾਂਦੀ ਹੈ 
 آن رسا مہِ ۄِیاپےَ چِنّد  
چند ۔ فکر ۔ غمگینی ۔
دنیاوی نعمتوں کے لطف لینے سے فکر تشویر آگھیرتی ہے ۔ (
1)

 ਹਰਿ ਰਸੁ ਪੀਵੈ ਅਲਮਸਤੁ ਮਤਵਾਰਾ ॥
har ras peevai almasat matvaaraa.
One who partakes the elixir of God’s Name, is totally absorbed and is captivated by it.
 
ਜੇਹੜਾ ਮਨੁੱਖ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮਅੰਮ੍ਰਿਤ ਪੀਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਉਸ ਰਸ ਵਿਚ ਪੂਰਨ ਤੌਰ ਤੇ ਮਸਤ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ਉਹ ਉਸ ਨਾਮਰਸ ਦਾ ਮਤਵਾਲਾ ਬਣ ਜਾਂਦਾ ਹੈ l
 ہرِ رسُ پیِۄےَ المستُ متۄارا  
المست۔ مکمل طور پر مجذو و محوا۔ متوار۔ متوالا۔ پریمی عاشق ۔
الہٰی عشق میں محو ومجذوب اور اس پیار کا لطف لینے والا المست رہتا ہے الہٰی لطف لے کر انسان پریمی ہو جاتا ہے ۔

 ਆਨ ਰਸਾ ਸਭਿ ਹੋਛੇ ਰੇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
aan rasaa sabh hochhay ray. ||1|| rahaa-o.
To him, all other worldly relishes seem worthless (1-pause).
 
ਉਸ ਨੂੰ ਦੁਨੀਆ ਦੇ ਹੋਰ ਸਾਰੇ ਰਸ (ਨਾਮਰਸ ਦੇ ਟਾਕਰੇ ਤੇਤੁੱਛ ਜਾਪਦੇ ਹਨ  ਰਹਾਉ  
 آن رسا سبھِ ہوچھے رے  رہاءُ  
ہوچھے پیکے ۔ بے معنی ۔(
1)۔ رہاؤ۔
۔ اس کے لئے دوسرے تمام لطف بد مزہ اور پھیکے ہیں(1) رہاؤ۔ 

 ਹਰਿ ਰਸ ਕੀ ਕੀਮਤਿ ਕਹੀ ਨ ਜਾਇ ॥
har ras kee keemat kahee na jaa-ay.
The worth of the elixir of God’s Name cannot be described.
 
ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮਰਸ ਦਾ ਮੁੱਲ ਬਿਆਨ ਹੀ ਨਹੀਂ ਕੀਤਾ ਜਾ ਸਕਦਾ
 ہرِ رس کیِ کیِمتِ کہیِ ن جاءِ 
الہٰی لطف کی قدروقیمت بیان نہیں ہو سکتا۔ 

 ਹਰਿ ਰਸੁ ਸਾਧੂ ਹਾਟਿ ਸਮਾਇ ॥
har ras saaDhoo haat samaa-ay.
The relish of God’s Name is always there in the Guru’s holy congregation.
ਇਹ ਨਾਮਰਸ ਗੁਰੂ ਦੇ ਹੱਟ ਵਿਚ (ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚਸਦਾ ਟਿਕਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
 ہرِ رسُ سادھوُ ہاٹِ سماءِ  
سادہو ہاٹ دکان پاکدامن۔ سمائے ۔ بستا ہے ۔ اوہر ہاٹ صحبت پاکدامن۔
یہ صرف پاکدامن کی دکان میں ہوتا ہے 

 ਲਾਖ ਕਰੋਰੀ ਮਿਲੈ ਨ ਕੇਹ ॥
laakh karoree milai na kayh.
The elixir of God’s Name cannot be obtained by anyone even for vast riches.
 
ਲੱਖਾਂ ਕ੍ਰੋੜਾਂ ਰੁਪਏ ਦਿੱਤਿਆਂ ਭੀ ਇਹ ਕਿਸੇ ਨੂੰ ਮਿਲ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ
 لاکھ کروریِ مِلےَ ن کیہ  
کیہہ کسے ۔ (
2)
یہ کسی کو نہ لاکھوں سے نہ کروڑوں سے مل سکتا ہے ۔ 

 ਜਿਸਹਿ ਪਰਾਪਤਿ ਤਿਸ ਹੀ ਦੇਹਿ ॥੨॥
jisahi paraapat tis hee deh. ||2||
God bestows this gift only to the one, who is so pre-ordained. ||2||
 
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਦੇ ਭਾਗਾਂ ਵਿਚ ਇਸ ਦੀ ਪ੍ਰਾਪਤੀ ਲਿਖੀ ਹੈ ਉਸੇ ਨੂੰ ਹੀ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਦੇਂਦਾ ਹੈਂ 
 جِسہِ پراپتِ تِس ہیِ دیہِ 
اے خدا جس کو تو دیتا ہے اسے ہی حاصل ہوتا ہے ۔ ـ
(2)

 ਨਾਨਕ ਚਾਖਿ ਭਏ ਬਿਸਮਾਦੁ ॥
naanak chaakh bha-ay bismaad.
O’ Nanak, he who has tasted this elixir has become wonder-struck.
 
ਹੇ ਨਾਨਕ! ( ਨਾਮਰਸਚੱਖ ਕੇ (ਕੋਈ ਇਸ ਦਾ ਸਵਾਦ ਬਿਆਨ ਨਹੀਂ ਕਰ ਸਕਦਾ ਜੇ ਕੋਈ ਜਤਨ ਕਰੇ ਤਾਂਹੈਰਾਨ ਪਿਆ ਹੁੰਦਾ ਹੈ 
 نانک چاکھِ بھۓ بِسمادُ  
چاکھ ۔ لطف اُٹھا کر ۔ بسماو۔ پر سکون۔
اے نانک جو کوئی اس کا لطف لیتا ہے حیران ہو جاتا ہے ۔ ہ 

 ਨਾਨਕ ਗੁਰ ਤੇ ਆਇਆ ਸਾਦੁ ॥
naanak gur tay aa-i-aa saad.
O’ Nanak, it is only through the Guru that one is able to realize its taste.
 
ਹੇ ਨਾਨਕਇਸ ਹਰਿਨਾਮਰਸ ਦਾ ਅਨੰਦ ਗੁਰੂ ਪਾਸੋਂ ਹੀ ਪ੍ਰਾਪਤ ਹੁੰਦਾ ਹੈ 
 نانک گُر تے آئِیا سادُ  
ساد۔ لطف۔ مزہ ۔
اے نانک یہ الہٰی نام کا لطف صرف مرشد سے ملتا ے

 ਈਤ ਊਤ ਕਤ ਛੋਡਿ ਨ ਜਾਇ ॥
eet oot kat chhod na jaa-ay.
Here and hereafter, he does not leave the elixir of Naam.
 
ਉਹ ਇਸ ਲੋਕ ਤੇ ਪਰਲੋਕ ਵਿਚ (ਕਿਸੇ ਭੀ ਹੋਰ ਪਦਾਰਥ ਦੀ ਖ਼ਾਤਰਇਸ ਨਾਮਰਸ ਨੂੰ ਛੱਡ ਕੇ ਨਹੀਂ ਜਾਂਦਾ l
 ایِت اوُت کت چھوڈِ ن جاءِ  
ایت اوت ۔ ہر دعاعالم ۔ کت کہیں۔
جو ہر دو عالم میں کہیں ساتھ نہیں چھوڑتا 

 ਨਾਨਕ ਗੀਧਾ ਹਰਿ ਰਸ ਮਾਹਿ ॥੩॥੨੭॥
naanak geeDhaa har ras maahi. ||3||27||
O’ Nanak, he remains charmed with the relish of God’s Name. ||3||27||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਉਹ ਸਦਾ ਹਰਿਨਾਮਰਸ ਵਿਚ ਹੀ ਮਸਤ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ ੨੭
 نانک گیِدھا ہرِ رس ماہِ ੨੭
گیدھا۔ گھجیا۔
اے نانک وہ ہمیشہ الہٰی نام میں ہی محو و مجذوب رہتا ہے

 ਆਸਾ ਮਹਲਾ ੫ ॥
 aasaa mehlaa 5.
 Raag Aasaa, Fifth Mehl:
 آسا مہلا   
 ਕਾਮੁ ਕ੍ਰੋਧੁ ਲੋਭੁ ਮੋਹੁ ਮਿਟਾਵੈ ਛੁਟਕੈ ਦੁਰਮਤਿ ਅਪੁਨੀ ਧਾਰੀ ॥
 kaam kroDh lobh moh mitaavai chhutkai durmat apunee Dhaaree.
O’ mortal, the Guru’s advice shall eradicate your lust, anger, greed, and worldly attachment, and your self-acquired evil intellect shall finish.
 
ਹੇ ਸੁੰਦਰੀ! (ਗੁਰੂ ਦਾ ਉਪਦੇਸ਼ ਤੇਰੇ ਅੰਦਰੋਂਕਾਮ ਕ੍ਰੋਧ ਲੋਭ ਮੋਹ ਨੂੰ ਮਿਟਾ ਦੇਵੇਗਾਤੇਰੀ ਆਪਣੀ ਹੀ ਪੈਦਾ ਕੀਤੀ ਹੋਈ ਭੈੜੀ ਮਤਿ (ਤੇਰੇ ਅੰਦਰੋਂਮੁੱਕ ਜਾਇਗੀ
 کامُ ک٘رودھُ لوبھُ موہُ مِٹاۄےَ چھُٹکےَ دُرمتِ اپُنیِ دھاریِ  
کام ۔ شہوت ۔ کرودھ ۔ غصہ ۔ لوبھ ۔ لالچ ۔ موہ ۔ دنیاوی دؤلت کی محبت۔ مٹاوے ۔ مٹاتا ہے ۔ چھٹکے ۔ چھوٹی ہے ۔ درمت بری سمجھ بد عقلی ۔ اپنی دھاری ۔ جو خود ہی اپنائی ہوئی ہے ۔
اے انسان
 شہوت۔ غصہ ۔ لالچ ۔ محبت کتم ہو جائے گی بد عقلی جہالت جو تیری خود پیدا کردہ ہے سے نجات مل جائے گی ۔ 

 ਹੋਇ ਨਿਮਾਣੀ ਸੇਵ ਕਮਾਵਹਿ ਤਾ ਪ੍ਰੀਤਮ ਹੋਵਹਿ ਮਨਿ ਪਿਆਰੀ ॥੧॥
ho-ay nimaanee sayv kamaaveh taa pareetam hoveh man pi-aaree. ||1||
Becoming humble, if you would meditate on God’s Name, then you would become pleasing to your beloved-God. ||1|
 
ਜੇ ਤੂੰ ਮਾਣ ਤਿਆਗ ਕੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸੇਵਾਭਗਤੀ ਕਰੇਂਗੀਤਾਂ ਪ੍ਰੀਤਮਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਮਨ ਵਿਚ ਪਿਆਰੀ ਲੱਗੇਂਗੀ  
 ہوءِ نِمانھیِ سیۄ کماۄہِ تا پ٘ریِتم ہوۄہِ منِ پِیاریِ  
نمانی۔ بغیر مان۔ غرور ۔ سیو ۔ کدمت ۔ پریتم ۔ پیار۔ مراد کدا من پیاری چاہیتی دل سے ۔ (
1)
اے انسان اگر تو عاجزی و انکساری سے خدمت کرے گا تو پیارے کے دل کا پیار ہو جائے گا۔

 ਸੁਣਿ ਸੁੰਦਰਿ ਸਾਧੂ ਬਚਨ ਉਧਾਰੀ ॥
sun sundar saaDhoo bachan uDhaaree.
Listen to the Guru’s word and save yourself from drowning in the world ocean of vices.
 
ਹੇ ਸੁੰਦਰੀਗੁਰੂ ਦੇ ਬਚਨ ਸੁਣ ਕੇ ਆਪਣੇ ਆਪ ਨੂੰ ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਵਿਚ ਡੁੱਬਣ ਤੋਂ ਬਚਾ
 سُنھِ سُنّدرِ سادھوُ بچن اُدھاریِ  
سندر۔ خوب صورت ۔ سادھو جس نے اپنے آپ کو پاک بنایا۔ پاکدامن ۔ سادھوبچن ۔ کلام پاکدامن ۔ ادھاری ۔ بچانے والے ۔
اے انسان خدا رسیدہ پاکدامن عارف کا کلام سن جو تجھے بچانے والا ہے ۔

 ਦੂਖ ਭੂਖ ਮਿਟੈ ਤੇਰੋ ਸਹਸਾ ਸੁਖ ਪਾਵਹਿ ਤੂੰ ਸੁਖਮਨਿ ਨਾਰੀ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
dookh bhookh mitai tayro sahsaa sukh paavahi tooN sukhman naaree. ||1|| rahaa-o.
O’ peace desiring mortal, your sorrow, desire for Maya and doubt shall vanish, and you shall enjoy peace. ||1||Pause||
 
ਹੇ ਆਪਣੇ ਮਨ ਵਿਚ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਟਿਕਾਈ ਰੱਖਣ ਦੀ ਚਾਹਵਾਨ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ,(ਗੁਰੂ ਦੀ ਬਾਣੀ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲਤੇਰਾ ਦੁੱਖ ਮਿਟ ਜਾਇਗਾ ਤੇਰੀ ਮਾਇਆ ਦੀ ਭੁੱਖ ਮਿਟ ਜਾਇਗੀ ਤੂੰ ਆਤਮਕ ਅਨੰਦ ਮਾਣੇਂਗੀ  ਰਹਾਉ 
 دوُکھ بھوُکھ مِٹےَ تیرو سہسا سُکھ پاۄہِ توُنّ سُکھمنِ ناریِ  رہاءُ  
سکھمن ناری ۔ مراد جس انسان کے دل میں روحانی چین سکون ہے ۔ (
1)رہاؤ۔
اس سے عذاب مٹ جائے گا دنیاوی دؤلت کی بھوک مٹ جائے گی ۔ تشویش اور فکر مٹ جائے گا اور روھانی سکون اور آرام ملے گا۔ (1)رہاؤ۔

 ਚਰਣ ਪਖਾਰਿ ਕਰਉ ਗੁਰ ਸੇਵਾ ਆਤਮ ਸੁਧੁ ਬਿਖੁ ਤਿਆਸ ਨਿਵਾਰੀ ॥
charan pakhaar kara-o gur sayvaa aatam suDh bikh ti-aas nivaaree.
Becoming most humble and following the Guru’s teachings, your soul would become pure and your desires for Maya would be quenched.
ਹੇ ਸੁੰਦਰੀਗੁਰੂ ਦੇ ਚਰਨ ਧੋ ਕੇ ਗੁਰੂ ਦੀ (ਦੱਸੀਸੇਵਾ ਕਰਿਆਤੇਰਾ ਆਤਮਾ ਪਵਿਤ੍ਰ ਹੋ ਜਾਇਗਾ ਇਹ ਸੇਵਾ ਤੇਰੇ ਅੰਦਰੋਂ ਮਾਇਆ ਦੀ ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾ ਨੂੰ ਮਿਟਾ ਦੇਵੇਗੀ
 چرنھ پکھارِ کرءُ گُر سیۄا آتم سُدھُ بِکھُ تِیاس نِۄاریِ  
چرن۔ پاؤن۔ بکھار ۔ جھاڑنا۔ گرسیوا۔ خدمت مرشد۔ آتم سدھ۔ روح پاک۔ وکھ دنیاوی زہریلی دولت ۔ تیاس۔ پیاس۔ کواہش۔ نواری ۔ مٹتی ہے ۔ دور ہوتی ہے ۔
مرشد کے پاؤں دھوؤ خدمت کرؤ اے انسان تیری روح پاک اور متبرک ہو جائے گی اور دنیاوی دولت کی زیر ختم ہو جائے گی ۔ 

 ਦਾਸਨ ਕੀ ਹੋਇ ਦਾਸਿ ਦਾਸਰੀ ਤਾ ਪਾਵਹਿ ਸੋਭਾ ਹਰਿ ਦੁਆਰੀ ॥੨॥
daasan kee ho-ay daas daasree taa paavahi sobhaa har du-aaree. ||2||
If you become a humble servant of the devotees of God you would obtain honor in God’s court.||2||
ਜੇ ਤੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਸੇਵਕਾਂ ਦੀ ਨਿਮਾਣੀ ਜਿਹੀ ਦਾਸੀ ਬਣ ਜਾਏਂ ਤਾਂ ਤੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਹਜ਼ੂਰੀ ਵਿਚ ਸੋਭਾਆਦਰ ਹਾਸਲ ਕਰੇਂਗੀ 
 داسن کیِ ہوءِ داسِ داسریِ تا پاۄہِ سوبھا ہرِ دُیاریِ  
داس۔ غلام ۔ خدمتگار ۔ نوکر (
2)داسری ۔ غلاموں کا غلام ۔ سوبھا ۔ شہرت ۔ ہر دو آری الہٰی در پر ۔ ـ(3)
اور غلاموں کا غلام ہو جا تو الہٰی دربار میں وقار شہرت پائے گا۔ (2)

 ਇਹੀ ਅਚਾਰ ਇਹੀ ਬਿਉਹਾਰਾ ਆਗਿਆ ਮਾਨਿ ਭਗਤਿ ਹੋਇ ਤੁਮ੍ਹ੍ਹਾਰੀ ॥
ihee achaar ihee bi-uhaaraa aagi-aa maan bhagat ho-ay tumHaaree.
This should be your conduct and lifestyle, by obeying the command of God you will be doing the true devotional worship.
 
ਇਹੀ ਕੁਝ ਤੇਰੇ ਵਾਸਤੇ ਧਾਰਮਿਕ ਰਸਮਾਂ ਦਾ ਕਰਨਾ ਹੈ ਇਹੀ ਤੇਰਾ ਨਿੱਤ ਦਾ ਵਿਹਾਰ ਚਾਹੀਦਾ ਹੈਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਰਜ਼ਾ ਨੂੰ ਸਿਰਮੱਥੇ ਤੇ ਮੰਨਣਾ ਤੇਰੀ ਪ੍ਰਭੂਭਗਤੀ ਹੋ ਜਾਇਗੀ
 اِہیِ اچار اِہیِ بِئُہارا آگِیا مانِ بھگتِ ہوءِ تُم٘ہ٘ہاریِ  
آچا۔ اخلاق ۔ بیؤبار۔ رواج ۔ رسم ۔ اگیا ۔ اجازت ۔ فرمان۔ مان ۔ حکیم تسلیم کرکے ۔ بھگت۔ پیار۔
یہی تیرے لئے اخلاق ، رسم ورواج ہے اورالہٰی رضا میں راضی اور فرمانبردار ہو تتیری یہی عبادت و ریاضت اور الہٰی عشق و پریم ہے ۔ 

 ਜੋ ਇਹੁ ਮੰਤ੍ਰੁ ਕਮਾਵੈ ਨਾਨਕ ਸੋ ਭਉਜਲੁ ਪਾਰਿ ਉਤਾਰੀ ॥੩॥੨੮॥
jo ih mantar kamaavai naanak so bha-ojal paar utaaree. ||3||28||
O’ Nanak, one who practices this Mantra, swims across the terrifying world-ocean of vices. ||3||28||
 
ਹੇ ਨਾਨਕਜੇਹੜਾ ਭੀ ਮਨੁੱਖ ਇਸ ਉਪਦੇਸ਼ ਨੂੰ ਕਮਾਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘ ਜਾਂਦਾ ਹੈ ੨੮
 جو اِہُ منّت٘رُ کماۄےَ نانک سو بھئُجلُ پارِ اُتاریِ ੨੮
منتر۔ نصیحت ۔ سبق۔ داعظ ۔ بھؤجل۔ دنیادار جو ایک خوفناک سمندر کی مانند ہے ۔
اے نانک جو اس واعظ ، پندو آموز۔ سبق اور نصیحت پر عمل کرے گا وہ اس کوفناک سمندر کی مانند عالم میں کامیابی حاصل کرے گا۔