Guru Granth Sahib Translation Project

Guru Granth Sahib Urdu Page 273

Page 273

ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੀ ਦ੍ਰਿਸਟਿ ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਬਰਸੀ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کی نگاہ سے امرت بہتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਬੰਧਨ ਤੇ ਮੁਕਤਾ ॥ رب کی معرفت رکھنے والا غلامی کے بندھن سے آزاد رہتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੀ ਨਿਰਮਲ ਜੁਗਤਾ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کی طرز زندگی بہت مقدس ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਭੋਜਨੁ ਗਿਆਨ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والے کا کھانا علم ہے۔
ਨਾਨਕ ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਬ੍ਰਹਮ ਧਿਆਨੁ ॥੩॥ اے نانک! واہے گرو کی معرفت رکھنے والا رب کے دھیان میں ڈوبا رہتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਏਕ ਊਪਰਿ ਆਸ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا صرف ایک رب میں بھروسا رکھتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਨਹੀ ਬਿਨਾਸ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا تباہ و برباد نہیں ہوتا۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਗਰੀਬੀ ਸਮਾਹਾ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا عاجزی و انکساری میں ہی رہتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਪਰਉਪਕਾਰ ਉਮਾਹਾ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا احسان کے جذبے سے سرشار رہتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਨਾਹੀ ਧੰਧਾ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا دنیاوی جھگڑوں سے بالاتر ہوتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਲੇ ਧਾਵਤੁ ਬੰਧਾ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا اپنے خواہشات کے جذبے کو اصول کا پابند رکھتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਹੋਇ ਸੁ ਭਲਾ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والے کا عمل اچھا ہے، وہ جو بھی کرتا ہے، اچھا ہی کرتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਸੁਫਲ ਫਲਾ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا پوری طرح کامیاب ہوتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਸੰਗਿ ਸਗਲ ਉਧਾਰੁ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والے کی صحبت میں رہنے سے نجات ملتی ہے۔
ਨਾਨਕ ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਜਪੈ ਸਗਲ ਸੰਸਾਰੁ ॥੪॥ اے نانک! واہے گرو کی معرفت رکھنے والے کی ساری دنیا تعریف کرتی ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਏਕੈ ਰੰਗ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا صرف ایک رب سے ہی محبت کرتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਬਸੈ ਪ੍ਰਭੁ ਸੰਗ ॥ رب اپنی معرفت رکھنے والے کے ساتھ ساتھ رہتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਨਾਮੁ ਆਧਾਰੁ ॥ رب کا نام ہی اس کی معرفت رکھنے والوں کی بنیاد ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਨਾਮੁ ਪਰਵਾਰੁ ॥ رب کا نام ہی اس کی معرفت رکھنے والوں کا خاندان ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਸਦਾ ਸਦ ਜਾਗਤ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا ہمیشہ بیدار رہتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਅਹੰਬੁਧਿ ਤਿਆਗਤ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا صفتِ کبر کی گندگی سے پاک رہتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਮਨਿ ਪਰਮਾਨੰਦ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والے کا دل اس کی یادوں میں غرق رہتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਘਰਿ ਸਦਾ ਅਨੰਦ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والے کے دل جیسی گھر میں ہمیشہ خوشی رہتی ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਸੁਖ ਸਹਜ ਨਿਵਾਸ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا ہمیشہ سکون و اطمینان کی زندگی گذارتا ہے۔
ਨਾਨਕ ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਨਹੀ ਬਿਨਾਸ ॥੫॥ اے نانک! واہے گرو کی معرفت رکھنے والا فنا نہیں ہوتا۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਬ੍ਰਹਮ ਕਾ ਬੇਤਾ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا ہمہ جہت ہستی ہوتی ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਏਕ ਸੰਗਿ ਹੇਤਾ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا صرف ایک رب سے محبت کرتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਹੋਇ ਅਚਿੰਤ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کے دل میں ہمیشہ بے فکری رہتی ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਨਿਰਮਲ ਮੰਤ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا کا منتر پاک کرنے والا ہوتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਜਿਸੁ ਕਰੈ ਪ੍ਰਭੁ ਆਪਿ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والا وہ ہوتا ہے جسے رب خود مقبول بناتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਬਡ ਪਰਤਾਪ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کی بڑی شان ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਦਰਸੁ ਬਡਭਾਗੀ ਪਾਈਐ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والے کا دیدار کسی خوش نصیب ہی کو حاصل ہوتی ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਉ ਬਲਿ ਬਲਿ ਜਾਈਐ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے پر ہمیشہ قربان جانا چاہئے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਉ ਖੋਜਹਿ ਮਹੇਸੁਰ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والے کو شیوشنکر بھی تلاش کرتے رہتے ہیں۔
ਨਾਨਕ ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਆਪਿ ਪਰਮੇਸੁਰ ॥੬॥ اے نانک! رب خود ہی ہرہما گیانی ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੀ ਕੀਮਤਿ ਨਾਹਿ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کی خوبیوں کا اندازہ نہیں لگایا جا سکتا۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੈ ਸਗਲ ਮਨ ਮਾਹਿ ॥ تمام خوبیاں رب کی معرفت رکھنے والے کے کے دل میں موجود ہیں۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਕਉਨ ਜਾਨੈ ਭੇਦੁ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کے راز کا علم کسے ہوسکتا ہے؟
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਉ ਸਦਾ ਅਦੇਸੁ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کو ہمیشہ سلام کرنا چاہیے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਕਥਿਆ ਨ ਜਾਇ ਅਧਾਖ੍ਯ੍ਯਰੁ ॥ واہے گرو کی معرفت رکھنے والے کی بڑائی کا ایک آدھ حرف بھی بیان نہیں کیا جا سکتا۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਸਰਬ ਕਾ ਠਾਕੁਰੁ ॥ رب کی معرفت رکھنے والا تمام جانداروں کا قابل احترام مالک ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੀ ਮਿਤਿ ਕਉਨੁ ਬਖਾਨੈ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کا اندازہ کون لگا سکتا ہے؟
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕੀ ਗਤਿ ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਜਾਨੈ ॥ صرف رب کی معرفت رکھنے والا ہی ایک رب کی معرفت رکھنے والے کی چال سے واقف ہوسکتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਅੰਤੁ ਨ ਪਾਰੁ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کی خوبیوں کی کوئی حد نہیں۔
ਨਾਨਕ ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਉ ਸਦਾ ਨਮਸਕਾਰੁ ॥੭॥ اے نانک! رب کی معرفت رکھنے والے کو ہمیشہ سلام کرتے رہو۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਸਭ ਸ੍ਰਿਸਟਿ ਕਾ ਕਰਤਾ ॥ رب کی معرفت رکھنے والا پوری دنیا کا بنانے والا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਸਦ ਜੀਵੈ ਨਹੀ ਮਰਤਾ ॥ رب کی معرفت رکھنے والا ہمیشہ زندہ رہتا ہے اور مرتا نہیں ۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਮੁਕਤਿ ਜੁਗਤਿ ਜੀਅ ਕਾ ਦਾਤਾ ॥ رب کی معرفت رکھنے والا جانداروں کو آزادی، طاقت اور زندگی دینے والا داتا ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਪੂਰਨ ਪੁਰਖੁ ਬਿਧਾਤਾ ॥ رب کی معرفت رکھنے والا کامل منتظم انسان ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਅਨਾਥ ਕਾ ਨਾਥੁ ॥ رب کی معرفت رکھنے والا یتیموں کا سرپرست ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਸਭ ਊਪਰਿ ਹਾਥੁ ॥ رب کی معرفت رکھنے والے کا محافظ ہاتھ پوری نسل انسانی پر ہے۔
ਬ੍ਰਹਮ ਗਿਆਨੀ ਕਾ ਸਗਲ ਅਕਾਰੁ ॥ یہ ساری دنیا کا پھیلاؤ رب کی معرفت رکھنے والے کا ہی ہے۔
Scroll to Top
https://halomasbup.kedirikab.go.id/laporan_desa/ http://magistraandalusia.fib.unand.ac.id/help/menang-gacor/ https://pbindo.fkip.unri.ac.id/stats/manja-gacor/
https://halomasbup.kedirikab.go.id/laporan_desa/ http://magistraandalusia.fib.unand.ac.id/help/menang-gacor/ https://pbindo.fkip.unri.ac.id/stats/manja-gacor/