Guru Granth Sahib Translation Project

Guru Granth Sahib Urdu Page 266

Page 266

ਅਨਿਕ ਜਤਨ ਕਰਿ ਤ੍ਰਿਸਨ ਨਾ ਧ੍ਰਾਪੈ ॥ بہت کوشش کرنے سے بھی لالچ ختم نہیں ہوتی۔
ਭੇਖ ਅਨੇਕ ਅਗਨਿ ਨਹੀ ਬੁਝੈ ॥ بہت سے مذہبی بھیس بدلنے سے (لالچ کی) آگ نہیں بجھتی۔
ਕੋਟਿ ਉਪਾਵ ਦਰਗਹ ਨਹੀ ਸਿਝੈ ॥ (ایسی) کروڑوں تدبیروں سے بھی انسان رب کے دربار میں نجات نہیں پاتا۔
ਛੂਟਸਿ ਨਾਹੀ ਊਭ ਪਇਆਲਿ ॥ وہ چاہے آسمان میں چلے جائیں یا پاتال میں چلے جائیں، ان کی نجات نہیں ہوتی،
ਮੋਹਿ ਬਿਆਪਹਿ ਮਾਇਆ ਜਾਲਿ ॥ جو لوگ لالچ کی وجہ سے مال کے جال میں پھنستے ہیں۔
ਅਵਰ ਕਰਤੂਤਿ ਸਗਲੀ ਜਮੁ ਡਾਨੈ ॥ انسان کے دوسرے سب کرتوتوں پر یمراج انھیں سزا دیتا ہے۔
ਗੋਵਿੰਦ ਭਜਨ ਬਿਨੁ ਤਿਲੁ ਨਹੀ ਮਾਨੈ ॥ (لیکن) واہے گرو کی پوجا کے بغیر موت ذرا بھی پروا نہیں کرتی۔
ਹਰਿ ਕਾ ਨਾਮੁ ਜਪਤ ਦੁਖੁ ਜਾਇ ॥ بھگوان کے نام کا ذکر کرنے سے ہر طرح کے دکھ دور ہو جاتے ہیں۔
ਨਾਨਕ ਬੋਲੈ ਸਹਜਿ ਸੁਭਾਇ ॥੪॥ نانک ! فطری مزاج یہی بولتا ہے۔
ਚਾਰਿ ਪਦਾਰਥ ਜੇ ਕੋ ਮਾਗੈ ॥ اگر کوئی آدمی چار مادوں: دھرم, ارتھ، کام، آزادی؛ کا خواہش مند ہو۔
ਸਾਧ ਜਨਾ ਕੀ ਸੇਵਾ ਲਾਗੈ ॥ تو اسے سنتوں کی خدمت میں لگنا چاہیے۔
ਜੇ ਕੋ ਆਪੁਨਾ ਦੂਖੁ ਮਿਟਾਵੈ ॥ اگر کوئی آدمی اپنا دکھ مٹانا چاہتا ہے تو
ਹਰਿ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਰਿਦੈ ਸਦ ਗਾਵੈ ॥ اسے اپنے دل میں ہری پرمیشور کا نام ہمیشہ یاد رکھنا چاہیے۔
ਜੇ ਕੋ ਅਪੁਨੀ ਸੋਭਾ ਲੋਰੈ ॥ اگر کوئی آدمی اپنی شان چاہتا ہو تو
ਸਾਧਸੰਗਿ ਇਹ ਹਉਮੈ ਛੋਰੈ ॥ وہ سنتوں کی صحبت میں رہ کر اس گھمنڈ کو چھوڑ دے۔
ਜੇ ਕੋ ਜਨਮ ਮਰਣ ਤੇ ਡਰੈ ॥ اگر کوئی آدمی پیدائش اور موت کے دکھ سے ڈرتا ہے،
ਸਾਧ ਜਨਾ ਕੀ ਸਰਨੀ ਪਰੈ ॥ تو اسے سنتوں کی پناہ لینا چاہیے۔
ਜਿਸੁ ਜਨ ਕਉ ਪ੍ਰਭ ਦਰਸ ਪਿਆਸਾ ॥ جس آدمی کو واہے گرو کے دیدار کی سخت خواہش ہے،
ਨਾਨਕ ਤਾ ਕੈ ਬਲਿ ਬਲਿ ਜਾਸਾ ॥੫॥ اے نانک! میں اس پر ہمیشہ قربان ہوں۔
ਸਗਲ ਪੁਰਖ ਮਹਿ ਪੁਰਖੁ ਪ੍ਰਧਾਨੁ ॥ تمام مردوں میں وہی مرد غالب ہے۔
ਸਾਧਸੰਗਿ ਜਾ ਕਾ ਮਿਟੈ ਅਭਿਮਾਨੁ ॥ جس آدمی کا صحبت میں رہ کر تکبر مٹ جاتا ہے۔
ਆਪਸ ਕਉ ਜੋ ਜਾਣੈ ਨੀਚਾ ॥ جو آدمی اپنے آپ کو ادنیٰ (عاجز) سمجھتا ہے ،
ਸੋਊ ਗਨੀਐ ਸਭ ਤੇ ਊਚਾ ॥ وہ سب سے بھلا (اونچا) سمجھا جاتا ہے۔
ਜਾ ਕਾ ਮਨੁ ਹੋਇ ਸਗਲ ਕੀ ਰੀਨਾ ॥ جس آدمی کا نفس سب کے قدموں کی دھول بن جاتا ہے،
ਹਰਿ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਤਿਨਿ ਘਟਿ ਘਟਿ ਚੀਨਾ ॥ وہ ہری پرمیشور کے نام کو ہر دل میں دیکھتا ہے۔
ਮਨ ਅਪੁਨੇ ਤੇ ਬੁਰਾ ਮਿਟਾਨਾ ॥ جو اپنے دل سے برائی کو مٹا دیتا ہے،
ਪੇਖੈ ਸਗਲ ਸ੍ਰਿਸਟਿ ਸਾਜਨਾ ॥ وہ سارے جہان کو اپنا دوست سمجھتا ہے۔
ਸੂਖ ਦੂਖ ਜਨ ਸਮ ਦ੍ਰਿਸਟੇਤਾ ॥ اے نانک! جو آدمی خوشی اور غم کو ایک جیسا سمجھتا ہے،
ਨਾਨਕ ਪਾਪ ਪੁੰਨ ਨਹੀ ਲੇਪਾ ॥੬॥ وہ گناہ اور نیکی سے پاک رہتا ہے۔
ਨਿਰਧਨ ਕਉ ਧਨੁ ਤੇਰੋ ਨਾਉ ॥ اے ناتھ! غریبوں کے لیے تیرا نام ہی دھن دولت ہے۔
ਨਿਥਾਵੇ ਕਉ ਨਾਉ ਤੇਰਾ ਥਾਉ ॥ بے سہارا کے لیے تیرا نام ہی سہار ہے۔
ਨਿਮਾਨੇ ਕਉ ਪ੍ਰਭ ਤੇਰੋ ਮਾਨੁ ॥ اے رب ! دھتکارے ہوؤں کی تو عزت ہے۔
ਸਗਲ ਘਟਾ ਕਉ ਦੇਵਹੁ ਦਾਨੁ ॥ تو ہی تمام جانداروں کو دینے والا ہے۔
ਕਰਨ ਕਰਾਵਨਹਾਰ ਸੁਆਮੀ ॥ اے دنیا کے مالک! تم خود ہی سب کچھ کرتے اور خود ہی ذی روحوں سے کرواتے ہو۔
ਸਗਲ ਘਟਾ ਕੇ ਅੰਤਰਜਾਮੀ ॥ تو بڑا عالم الغیب ہے۔
ਅਪਨੀ ਗਤਿ ਮਿਤਿ ਜਾਨਹੁ ਆਪੇ ॥ اے آقا! اپنی رفتار اور اپنی حدود تم خود ہی جانتے ہو۔
ਆਪਨ ਸੰਗਿ ਆਪਿ ਪ੍ਰਭ ਰਾਤੇ ॥ اے رب ! اپنے آپ سے تم خود ہی رنگے ہوئے ہو۔
ਤੁਮ੍ਹ੍ਹਰੀ ਉਸਤਤਿ ਤੁਮ ਤੇ ਹੋਇ ॥ اے واہے گرو ! اپنی تعریف صرف تم ہی کر سکتے ہیں۔
ਨਾਨਕ ਅਵਰੁ ਨ ਜਾਨਸਿ ਕੋਇ ॥੭॥ اے نانک! کوئی دوسرا تیری عظمت کو نہیں جانتا۔
ਸਰਬ ਧਰਮ ਮਹਿ ਸ੍ਰੇਸਟ ਧਰਮੁ ॥ تمام مذاہب میں سب سے بڑا مذہب یہ ہے کہ
ਹਰਿ ਕੋ ਨਾਮੁ ਜਪਿ ਨਿਰਮਲ ਕਰਮੁ ॥ واہے گرو کے نام کا ذکر کرنا اور پاکیزہ اعمال کرنا۔
ਸਗਲ ਕ੍ਰਿਆ ਮਹਿ ਊਤਮ ਕਿਰਿਆ ॥ تمام مذہبی اعمال میں سب سے اچھا عمل یہ ہے کہ
ਸਾਧਸੰਗਿ ਦੁਰਮਤਿ ਮਲੁ ਹਿਰਿਆ ॥ نیک صحبت میں رہ کر نادانی کی گندگی کو دھو پھینکنا۔
ਸਗਲ ਉਦਮ ਮਹਿ ਉਦਮੁ ਭਲਾ ॥ تمام کوششوں میں بہتر کوشش یہی ہے کہ
ਹਰਿ ਕਾ ਨਾਮੁ ਜਪਹੁ ਜੀਅ ਸਦਾ ॥ ہمیشہ دل میں ہری کے نام کا ذکر کرتے رہو۔
ਸਗਲ ਬਾਨੀ ਮਹਿ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਬਾਨੀ ॥ تمام صداؤں میں صدائے امرت یہ ہے کہ
ਹਰਿ ਕੋ ਜਸੁ ਸੁਨਿ ਰਸਨ ਬਖਾਨੀ ॥ واہے گرو کی عظمت کو سنو اور اس کو زبان سے بولو۔
ਸਗਲ ਥਾਨ ਤੇ ਓਹੁ ਊਤਮ ਥਾਨੁ ॥ اے نانک! وہ جگہ سب جگہوں میں بہترین ہے،
ਨਾਨਕ ਜਿਹ ਘਟਿ ਵਸੈ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ॥੮॥੩॥ جس میں بھگوان کا نام رہتا ہے۔
ਸਲੋਕੁ ॥ شلوک
ਨਿਰਗੁਨੀਆਰ ਇਆਨਿਆ ਸੋ ਪ੍ਰਭੁ ਸਦਾ ਸਮਾਲਿ ॥ اے حقیر اور بے وقوف مخلوق! اس واہے گرو کو ہمیشہ یاد رکھ۔
ਜਿਨਿ ਕੀਆ ਤਿਸੁ ਚੀਤਿ ਰਖੁ ਨਾਨਕ ਨਿਬਹੀ ਨਾਲਿ ॥੧॥ اے نانک! جس نے تجھے پیدا کیا ہے، اس کو اپنے دل میں بسا، صرف واہے گرو ہی تیرا ساتھ دے گا۔1۔
ਅਸਟਪਦੀ ॥ اشٹپدی۔
ਰਮਈਆ ਕੇ ਗੁਨ ਚੇਤਿ ਪਰਾਨੀ ॥ اے فانی مخلوق! سب جگہ موجود رام کی صفات بیان کر۔
ਕਵਨ ਮੂਲ ਤੇ ਕਵਨ ਦ੍ਰਿਸਟਾਨੀ ॥ تیری کیا اصل ہے اور تو کیسا دکھائی دیتا ہے۔
ਜਿਨਿ ਤੂੰ ਸਾਜਿ ਸਵਾਰਿ ਸੀਗਾਰਿਆ ॥ جس نے تجھے پیدا کیا، سنوارا اور عزت والا بنایا ہے،
ਗਰਭ ਅਗਨਿ ਮਹਿ ਜਿਨਹਿ ਉਬਾਰਿਆ ॥ جس نے تیری رحم کی آگ میں حفاظت کی ہے،
ਬਾਰ ਬਿਵਸਥਾ ਤੁਝਹਿ ਪਿਆਰੈ ਦੂਧ ॥ جس نے تجھے بچپن میں پینے کے لیے دودھ دیا ہے،
ਭਰਿ ਜੋਬਨ ਭੋਜਨ ਸੁਖ ਸੂਧ ॥ جس نے تجھے جوانی میں رزق، خوشی اور سمجھ دی۔
ਬਿਰਧਿ ਭਇਆ ਊਪਰਿ ਸਾਕ ਸੈਨ ॥ اور جس نے جب تو بوڑھا ہوا، تو سگے رشتے دار اور دوست
Scroll to Top
https://halomasbup.kedirikab.go.id/laporan_desa/ http://magistraandalusia.fib.unand.ac.id/help/menang-gacor/ https://pbindo.fkip.unri.ac.id/stats/manja-gacor/
https://halomasbup.kedirikab.go.id/laporan_desa/ http://magistraandalusia.fib.unand.ac.id/help/menang-gacor/ https://pbindo.fkip.unri.ac.id/stats/manja-gacor/