Urdu-Page-262

ਨਾਨਕ ਦੀਜੈ ਨਾਮ ਦਾਨੁ ਰਾਖਉ ਹੀਐ ਪਰੋਇ ੫੫
Nanak deejai naam daan raakha-o hee-ai paro-ay. ||55||
O’ God, bless me with the gift of Naam, I may keep it enshrined in my heart, says Nanak.
ਮੈਨੂੰ ਆਪਣੇ ਨਾਮ ਦਾ ਦਾਨ ਬਖ਼ਸ਼, (ਇਹ ਦਾਨਮੈਂ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਪ੍ਰੋ ਕੇ ਰੱਖਾਂ 
نانک دیِجےَ نام دانُ راکھءُ ہیِۓَ پرۄءِ
اے خدایا مجھے نام کے تحفہ سے نوازے ، میں اسے اپنے دل میں سنبھال سکتا ہوں ، نانک کہتے ہیں۔

ਸਲੋਕੁ 
salok.
Shalok:
سلۄکُ
ਗੁਰਦੇਵ ਮਾਤਾ ਗੁਰਦੇਵ ਪਿਤਾ ਗੁਰਦੇਵ ਸੁਆਮੀ ਪਰਮੇਸੁਰਾ 
gurdayv maataa gurdayv pitaa gurdayv su-aamee parmaysuraa.
The Guru is our spiritual mother, father, master and embodiment of God.
ਗੁਰੂ ਹੀ ਮਾਂ ਹੈਗੁਰੂ ਹੀ ਪਿਉ ਹੈ (ਗੁਰੂ ਹੀ ਆਤਮਕ ਜਨਮ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈ), ਗੁਰੂ ਮਾਲਕਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਰੂਪ ਹੈ
گُردیو ماتا گُردیو پِتا گُردیو سُیامی پرمیسُرا
گرو ہماری روحانی ماں ، باپ ، آقا اور خدا کا مجسم ہے۔

ਗੁਰਦੇਵ ਸਖਾ ਅਗਿਆਨ ਭੰਜਨੁ ਗੁਰਦੇਵ ਬੰਧਿਪ ਸਹੋਦਰਾ 
gurdayv sakhaa agi-aan bhanjan gurdayv banDhip sahodaraa.
The Guru is our companion and the destroyer of ignorance; The Guru is our relative and brother.
ਗੁਰੂ (ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਦਾਹਨੇਰਾ ਨਾਸ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਮਿੱਤਰ ਹੈਗੁਰੂ ਹੀ (ਤੋੜ ਨਿਭਣ ਵਾਲਾਸੰਬੰਧੀ ਤੇ ਭਰਾ ਹੈ
گُردیو سکھا اگِیان بھنّجنُ گُردیو بنّدھپِ سہۄدرا
گرو ہمارا ساتھی اور جہالت کا فنا کرنے والا ہے۔ گرو ہمارا رشتہ دار اور بھائی ہے

ਗੁਰਦੇਵ ਦਾਤਾ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਉਪਦੇਸੈ ਗੁਰਦੇਵ ਮੰਤੁ ਨਿਰੋਧਰਾ 
gurdayv daataa har naam updaysai gurdayv mant niroDharaa.
The Guru is the benefactor and the Spiritual teacher; The Guru’s word of wisdom is never ineffective.
ਗੁਰੂ (ਅਸਲੀਦਾਤਾ ਹੈ ਜੋ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਉਪਦੇਸ਼ਦਾ ਹੈਗੁਰੂ ਦਾ ਉਪਦੇਸ਼ ਐਸਾ ਹੈ ਜਿਸ ਦਾ ਅਸਰ (ਕੋਈ ਵਿਕਾਰਗਵਾ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ
گُردیو داتا ہرِ نامُ اُپدیسےَ گُردیو منّتُ نِرۄدھرا
گورو مددگار اور روحانی استاد ہے۔ گرو کی حکمت کا لفظ کبھی بھی بے اثر نہیں ہوتا ہے۔ 

ਗੁਰਦੇਵ ਸਾਂਤਿ ਸਤਿ ਬੁਧਿ ਮੂਰਤਿ ਗੁਰਦੇਵ ਪਾਰਸ ਪਰਸ ਪਰਾ 
gurdayv saaNt sat buDh moorat gurdayv paaras paras paraa.
The Guru is the image of peace, truth and wisdom; the Guru’s touch is superior than the touch of paaras (mythical philosopher’s stone).
ਗੁਰੂ ਸ਼ਾਂਤੀ ਸੱਚ ਅਤੇ ਅਕਲ ਦਾ ਸਰੂਪ ਹੈਗੁਰੂ ਇਕ ਐਸਾ ਪਾਰਸ ਹੈ ਜਿਸ ਦੀ ਛੋਹ ਪਾਰਸ ਦੀ ਛੋਹ ਨਾਲੋਂ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਹੈ 
گُردیو سانْتِ ستِ بُدھِ مۄُرتِ گُردیو پارس پرس پرا
گرو امن ، سچائی اور حکمت کا سایہ ہے۔ پارس (پورانیک فلسفیوں کے پتھر) کے لمس سے بھی گرو کا لمس بلند ہے۔

ਗੁਰਦੇਵ ਤੀਰਥੁ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਸਰੋਵਰੁ ਗੁਰ ਗਿਆਨ ਮਜਨੁ ਅਪਰੰਪਰਾ 
gurdayv tirath amrit sarovar gur gi-aan majan apramparaa.
The Guru is the place of Pilgrimage and the pool of ambrosial nectar; to follow the Guru’s teachings is like the most sublime ablution.
ਗੁਰੂ (ਸੱਚਾਤੀਰਥ ਹੈਅੰਮ੍ਰਿਤ ਦਾ ਸਰੋਵਰ ਹੈਗੁਰੂ ਦੇ ਗਿਆਨ –ਜਲ ਦਾ ਇਸ਼ਨਾਨ ( ਸਾਰੇ ਤੀਰਥਾਂ ਨਾਲੋਂਬਹੁਤ ਹੀ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਹੈ
گُردیو تیِرتھُ انّم٘رِت سرۄورُ گُر گِیان مجنُ اپرنّپرا
گورو زیارت کا مقام اور عمیق امرت کا تالاب ہے۔ گرو کی تعلیمات پر عمل کرنا سب سے عمدہ وضو کی طرح ہے۔

 ਗੁਰਦੇਵ ਕਰਤਾ ਸਭਿ ਪਾਪ ਹਰਤਾ ਗੁਰਦੇਵ ਪਤਿਤ ਪਵਿਤ ਕਰਾ 
gurdayv kartaa sabh paap hartaa gurdayv patit pavit karaa.
The Guru is the embodiment of the Creator and the destroyer of all sins; the Guru is the purifier of the heart of the sinners.
ਗੁਰੂ ਕਰਤਾਰ ਦਾ ਰੂਪ ਹੈਸਾਰੇ ਪਾਪਾਂ ਨੂੰ ਦੂਰ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈਗੁਰੂ ਵਿਕਾਰੀ ਬੰਦਿਆਂ (ਦੇ ਹਿਰਦੇਨੂੰ ਪਵਿੱਤਰ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈ 
گُردیو کرتا سبھِ پاپ ہرتا گُردیو پتِت پوِت کرا
خدائی گورو خالق ہے ، اور تمام گناہوں کو ختم کرنے والا ہے۔ خدائی گرو گنہگاروں کو پاک کرنے والا ہے۔

 ਗੁਰਦੇਵ ਆਦਿ ਜੁਗਾਦਿ ਜੁਗੁ ਜੁਗੁ ਗੁਰਦੇਵ ਮੰਤੁ ਹਰਿ ਜਪਿ ਉਧਰਾ 
gurdayv aad jugaad jug jug gurdayv mant har jap uDhraa.
The Guru existed from the beginning of time, through ages upon ages; by remembering the Guru’s Mantra, one is saved from the vices.
ਜਦੋਂ ਤੋਂ ਜਗਤ ਬਣਿਆ ਹੈ ਗੁਰੂ ਸ਼ੂਰੂ ਤੋਂ ਹੀ ਹਰੇਕ ਜੁਗ ਵਿਚ (ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਉਪਦੇਸ਼ਦਾਤਾਹੈ ਗੁਰੂ ਦਾ ਦਿੱਤਾ ਹੋਇਆ ਹਰਿਨਾਮ ਮੰਤ੍ਰ ਜਪ ਕੇ (ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਦੇ ਵਿਕਾਰਾਂ ਦੀਆਂ ਲਹਿਰਾਂ ਤੋਂਪਾਰ ਲੰਘ ਜਾਈਦਾ ਹੈ 
گُردیو آدِ جُگادِ جُگُ جُگُ گُردیو منّتُ ہرِ جپِ اُدھرا
خدائی گرو پہلے ہی دور میں ، ہر عمر میں ، ہر دور میں موجود تھا۔ خدائی گرو خداوند کے نام کا منتر ہے۔ اس کا نعرہ لگانے سےانسان بچ جاتا ہے۔

ਗੁਰਦੇਵ ਸੰਗਤਿ ਪ੍ਰਭ ਮੇਲਿ ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਹਮ ਮੂੜ ਪਾਪੀ ਜਿਤੁ ਲਗਿ ਤਰਾ 
gurdayv sangat parabh mayl kar kirpaa ham moorh paapee jit lag taraa.
O’ God, show mercy and unite us with the company of the Guru so that we, the ignorant sinners, may also swim across the world-ocean of vices.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਮਿਹਰ ਕਰਸਾਨੂੰ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਦੇਹਤਾ ਕਿ ਅਸੀਂ ਮੂਰਖ ਪਾਪੀ ਉਸ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ (ਰਹਿ ਕੇਤਰ ਜਾਈਏ 
گُردیو سنّگتِ پ٘ربھ میلِ کرِ کِرپا ہم مۄُڑ پاپی جِتُ لگِ ترا
اے خدا ، مجھ پر مہربانی فرما ، تاکہ میں خدائی گرو کے ساتھ رہوں۔ میں ایک بے وقوف گنہگار ہوں ، لیکن اس کو تھامے رکھنا ، مجھے پار کیا جائے گا۔

ਗੁਰਦੇਵ ਸਤਿਗੁਰੁ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮੁ ਪਰਮੇਸਰੁ ਗੁਰਦੇਵ ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਨਮਸਕਰਾ 
gurdayv satgur paarbarahm parmaysar gurdayv naanak har namaskaraa. ||1||
O’ Nanak, the Guru is the embodiment of the all pervading God; therefore, we should all bow to the Guru in humble reverence. ||1||
ਗੁਰੂ ਪਰਮੇਸਰ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਦਾ ਰੂਪ ਹੈ ਹੇ ਨਾਨਕਹਰੀ ਦੇ ਰੂਪ ਗੁਰੂ ਨੂੰ (ਸਦਾਨਮਸਕਾਰ ਕਰਨੀ ਚਾਹੀਦੀ ਹੈ
گُردیو ستِگُرُ پارب٘رہمُ پرمیسرُ گُردیو نانک ہرِ نمسکرا
خدائی گرو سچا گرو ، اعلی خداوند خدا ، ماورائے خدا ہے۔ نانک خداوند ، خدائی گرو کے ساتھ عاجزانہ تعظیم کرتے ہیں۔

ਏਹੁ ਸਲੋਕੁ ਆਦਿ ਅੰਤਿ ਪੜਣਾ 
ayhu salok aad ant parhnaa.
This Salok is to be recited at the beginning and at the end of Bawan Akhri.
ਇਹ ਸਲੋਕ ਇਸ ‘ਬਾਵਨ ਅਖਰੀ‘ ਦੇ ਸ਼ੁਰੂ ਵਿਚ ਭੀ ਪੜ੍ਹਨਾ ਹੈਤੇ ਅਖ਼ੀਰ ਵਿਚ ਭੀ ਪੜ੍ਹਨਾ ਹੈ
ایہُ سلۄکُ آدِ انّتِ پڑݨا
شروع اور آخر میں یہ شلوک پڑھیں

ਗਉੜੀ ਸੁਖਮਨੀ ਮਃ  
ga-orhee sukhmanee mehlaa 5.
Raag Gauree, fifth Guru: SUKHMANI means the crown bead of bliss.
گئُڑی سُکھمنی محلا 5

ਸਲੋਕੁ 
salok.
Shalok:
سلۄکُ
 ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ 
 ik-oNkaar satgur parsaad.
One eternal God, realized by the Guru’s grace.
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 ستِگُر پ٘رسادِ
ایک ابدی خدا ، جو صرف گرو کے فضل سے حاصل ہوتا ہے

ਆਦਿ ਗੁਰਏ ਨਮਹ 
aad gur-ay namah.
I bow to the Primal Guru.
(ਮੇਰੀਉਸ ਸਭ ਤੋਂ ਵੱਡੇ (ਅਕਾਲ ਪੁਰਖਨੂੰ ਨਮਸਕਾਰ ਹੈ ਜੋ (ਸਭ ਦਾਮੁੱਢ ਹੈ,
آدِ گُرۓ نمہ
میں اول گرو کو سجدہ کرتا ہوں

ਜੁਗਾਦਿ ਗੁਰਏ ਨਮਹ 
jugaad gur-ay namah.
I bow to the Guru who was before the beginning of the ages.
ਅਤੇ ਜੋ ਜੁਗਾਂ ਦੇ ਮੁੱਢ ਤੋਂ ਹੈ
جُگادِ گُرۓ نمہ
میں گرو کو جھکتا ہوں جو زمانے کے آغاز سے پہلے تھا

ਸਤਿਗੁਰਏ ਨਮਹ 
satgur-ay namah.
I bow to the eternal True Guru.
ਸਤਿਗੁਰੂ ਨੂੰ (ਮੇਰੀਨਮਸਕਾਰ ਹੈ,
ستِگُرۓ نمہ
میں ابدی سچے گرو کو سجدہ کرتا ہوں

ਸ੍ਰੀ ਗੁਰਦੇਵਏ ਨਮਹ 
saree gurdayv-ay namah. ||1||
I bow to the Great, Divine Guru.
ਸ੍ਰੀ ਗੁਰਦੇਵ ਜੀ ਨੂੰ (ਮੇਰੀਨਮਸਕਾਰ ਹੈ 
س٘ری گُردیوۓ نمہ
میں عظیم الہی گرو کے سامنے جھکتا ہوں

ਅਸਟਪਦੀ 
asatpadee.
Ashtapadee:
اسٹپدی
ਸਿਮਰਉ ਸਿਮਰਿ ਸਿਮਰਿ ਸੁਖੁ ਪਾਵਉ 
simra-o simar simar sukh paava-o.
I remember God with loving devotion and by remembering Him at all the time, I experience eternal bliss,
ਮੈਂ (ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦਾ ਨਾਮਸਿਮਰਾਂ ਤੇ ਸਿਮਰ ਸਿਮਰ ਕੇ ਸੁਖ ਹਾਸਲ ਕਰਾਂ;
سِمرءُ سِمرِ سِمرِ سُکھُ پاوءُ
اس کی یاد میں غور و فکر کریں ، غور کریں ، غور کریں اور سکون حاصل کریں۔

ਕਲਿ ਕਲੇਸ ਤਨ ਮਾਹਿ ਮਿਟਾਵਉ 
kal kalays tan maahi mitaava-o.
and dispel all worries and anguish that from my mind
(ਇਸ ਤਰ੍ਹਾਂਸਰੀਰ ਵਿਚ (ਜੋਦੁੱਖ ਬਿਖਾਂਧ (ਹਨ ਉਹਨਾਂ ਨੂੰਮਿਟਾ ਲਵਾਂ
کلِ کلیس تن ماہِ مِٹاوءُ
آپ کے جسم سے پریشانیاں اور تکلیفیں دور ہوجائیں گی

ਸਿਮਰਉ ਜਾਸੁ ਬਿਸੁੰਭਰ ਏਕੈ 
 simra-o jaas bisumbhar aikai.
I contemplate on the One who preserves the universe.
ਇਕ ਜਗਤ ਪਾਲਕ (ਹਰੀਦਾ ਨਾਮ ਨੂੰ ਯਾਦ ਕਰ
سِمرءُ جاسُ بِسُنّبھر ایکے
اس کی تعریف کرتے ہوئے یاد رکھو جس نے ساری کائنات کو پھیلادیا َ

ਨਾਮੁ ਜਪਤ ਅਗਨਤ ਅਨੇਕੈ 
naam japat agnat anaykai.
Countless people remember Him
ਅਨੇਕਾਂ ਤੇ ਅਣਗਿਣਤ (ਜੀਵ) ਉਸ ਨੂੰ ਜਪਦੇ ਹਨ,
نامُ جپت اگنت انیکے
اس کا نام بہت سے طریقوں سے ، ان گنت لوگوں نے منایا ہے۔ 

ਬੇਦ ਪੁਰਾਨ ਸਿੰਮ੍ਰਿਤਿ ਸੁਧਾਖ੍ਯ੍ਯਰ 
bayd puraan simrit suDhaakh-yar.
The Vedas, the Puranas and the Smritis, the purest of utterances,
ਵੇਦਾਂ ਪੁਰਾਨਾਂ ਤੇ ਸਿਮ੍ਰਿਤੀਆਂ ਨੇ
بید پُران سِنّم٘رِتِ سُدھاکھ٘ېر
وید پران اور سمرتی ، یہ خالص ترین الفاظ ہیں 

ਕੀਨੇ ਰਾਮ ਨਾਮ ਇਕ ਆਖ੍ਯ੍ਯਰ 
keenay raam naam ik aakh-yar.
have recognized the One, the Name of God to be the most sacred.
ਇਕ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੇ ਨਾਮ ਨੂੰ ਹੀ ਸਭ ਤੋਂ ਪਵਿੱਤ੍ਰ ਨਾਮ ਮੰਨਿਆ ਹੈ
کیِنے رام نام اِک آکھ٘ېر
رب کے ایک مقدس نام سے پیدا کئے گئے ہیں

ਕਿਨਕਾ ਏਕ ਜਿਸੁ ਜੀਅ ਬਸਾਵੈ  ਤਾ ਕੀ ਮਹਿਮਾ ਗਨੀ  ਆਵੈ 
kinkaa ayk jis jee-a basaavai. taa kee mahimaa ganee na aavai.
That person’s glory cannot be described in whose heart, God instills even an iota of Naam.
ਜਿਸ (ਮਨੁੱਖਦੇ ਜੀ ਵਿਚ (ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਅਪਨਾ ਨਾਮਥੋੜਾ ਜਿਹਾ ਭੀ ਵਸਾਉਂਦਾ ਹੈ,ਉਸ ਦੀ ਵਡਿਆਈ ਬਿਆਨ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦੀ
کنکا ایک جِسُ جیء بساوےَ تا کی مہِما گنی ن آوےَ
وہ ، جس کی روح میں ایک ہی رب رہتا ہے اس کی شان کی تعریف نہیں کی جا سکتی۔

ਕਾਂਖੀ ਏਕੈ ਦਰਸ ਤੁਹਾਰੋ  ਨਾਨਕ ਉਨ ਸੰਗਿ ਮੋਹਿ ਉਧਾਰੋ 
kaaNkhee aikai daras tuhaaro. naanak un sang mohi uDhaaro. ||1||
Nanak says, O’ God, save me along with those who yearn to experience your holy presence.
(ਹੇ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ!) ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਤੇਰੇ ਦੀਦਾਰ ਦੇ ਚਾਹਵਾਨ ਹਨਉਨ੍ਹਾਂ ਦੇ ਨਾਲ ਨਾਨਕ ਦਾ ਪਾਰਉਤਾਰਾ ਕਰ ਦੇ 
کانْکھی ایکےَ درس تُہارۄ نانک اُن سنّگِ مۄہِ اُدھارۄ
وہ لوگ جو صرف آپ کے درشن کی برکت کے لئے تڑپ رہے ہیں۔اے نانک مجھے بھی ان کے ساتھ بچا

ਸੁਖਮਨੀ ਸੁਖ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਪ੍ਰਭ ਨਾਮੁ 
sukhmanee sukh amrit parabh naam.
The ambrosial Name of God is the crown jewel (the essence) of all peace and bliss,
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਅਮਰ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਤੇ ਸੁਖਦਾਈ ਨਾਮ (ਸਭਸੁਖਾਂ ਦੀ ਮਣੀ ਹੈ,
سُکھمنی سُکھ انّم٘رِت پ٘ربھ نامُ 
سکھمنی منی ۔ قیمتی سکھ ۔ بلند عظمت کھ ۔ انمر ت ۔ پربھ نام۔ آب حیات ہے الہٰی نام سچ حق و حقیقت
الہٰی نام دائمی صدیوی زندگی عنایت کرنے والا ہے ۔ اور آرام کی ایک قیمتی منی ہے

ਭਗਤ ਜਨਾ ਕੈ ਮਨਿ ਬਿਸ੍ਰਾਮ  ਰਹਾਉ 
 bhagat janaa kai man bisraam. Rahaa-o.
and this nectar- Name of God resides in the hearts of His true devotees. ll pause ll ਇਸ ਦਾ ਟਿਕਾਣਾ ਭਗਤਾਂ ਦੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਹੈ l
بھگت جنا کےَ منِ بِس٘رام رہاءُ
۔ بھگت۔ عابد۔ عاشقان الہٰی وسرام ۔ ٹھہراؤ ۔ ٹھکانہ ۔ رہاؤ
۔ جو عابدان و عاشقان الہٰی میں بستا ہے ۔ رہا

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਗਰਭਿ  ਬਸੈ 
parabh kai simran garabh na basai.
By remembering God, one is freed from cycle of birth and death.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਨਾਲ (ਜੀਵਜਨਮ ਵਿਚ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦਾ,
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ گربھِ ن بسےَ
گربھ ۔ ماں کا پیٹ مراد تناسخ ۔ 
الہٰی یاد سے تناسخ مٹتا ہے

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਦੂਖੁ ਜਮੁ ਨਸੈ 
parabh kai simran dookh jam nasai.
By remembering God, the fear of demon goes away.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਨਾਲ (ਜੀਵ ਦਾਦੁਖ ਤੇ ਜਮ (ਦਾ ਡਰਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ دۄُکھُ جمُ نسےَ
دوکھ جنم۔ موت کا عذاب ۔
الہٰی یاد سے عذاب مٹتا ہے 

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਕਾਲੁ ਪਰਹਰੈ 
parabh kai simran kaal parharai.
By remembering God, the fear of death vanishes.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਨਾਲ ਮੌਤ (ਦਾ ਭਉਪਰੇ ਹਟ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ کالُ پرہرےَ
کال ۔ موت۔ پریرے ۔ مٹتا ہے ۔ 
۔ اور موت کا عذاب مٹتا ہے

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਦੁਸਮਨੁ ਟਰੈ 
parabh kai simran dusman tarai.
Remembering God, one’s vices are eradicated
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਨਾਲ (ਵਿਕਾਰ ਰੂਪੀਦੁਸ਼ਮਨ ਟਲ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
پربھ کےَ سِمرنِ دُسمنُ ٹرےَ
خد ا کی یاد سے روحانی موت ختم ہوجاتی نہیں

ਪ੍ਰਭ ਸਿਮਰਤ ਕਛੁ ਬਿਘਨੁ  ਲਾਗੈ 
parabh simrat kachh bighan na laagai.
Remembering God, one meets no obstacles in life.
ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਿਮਰਿਆਂ (ਜ਼ਿੰਦਗੀ ਦੇ ਰਾਹ ਵਿਚਕੋਈ ਰੁਕਾਵਟ ਨਹੀਂ ਪੈਂਦੀ,
پ٘ربھ سِمرت کچھُ بِگھنُ ن لاگے
لڑے ۔ ٹلتا ہے ۔ وگھن۔ رکاوٹ
الہٰی یاد سے رکاوٹیں دور ہو جاتی ہیں

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਅਨਦਿਨੁ ਜਾਗੈ 
parabh kai simran an-din jaagai.
By remembering God, one always remains alert from vices and worldly temptations.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਨਾਲ (ਮਨੁੱਖਹਰ ਵੇਲੇ (ਵਿਕਾਰਾਂ ਵਲੋਂਸੁਚੇਤ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ اندِنُ جاگے
۔ جاگے ۔ بیداری پیدا ہوتی ہے ۔ اندن ۔ روز و شب۔
الہٰی یاد سے انسان بیداری ہوجاتا ہے 

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਭਉ  ਬਿਆਪੈ 
parabh kai simran bha-o na bi-aapai.
Remembering God, one is not overpowered by fear.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਨਾਲ (ਕੋਈਡਰ (ਜੀਵ ਉਤੇਦਬਾਉ ਨਹੀਂ ਪਾ ਸਕਦਾ,
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ بھءُ ن بِیاپےَ
۔ الہٰی یاد سے خوف ختم ہوجاتا 

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਦੁਖੁ  ਸੰਤਾਪੈ 
parabh kai simran dukh na santaapai.
Remembering God, one does not suffer sorrow.
ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਨਾਲ (ਕੋਈਦੁੱਖ ਵਿਆਕੁਲ ਨਹੀਂ ਕਰ ਸਕਦਾ 
پربھ کےَ سِمرنِ دُکھُ ن سنّتاپےَ
سنتاپے ۔ پریشانی ۔ ۔
 عذاب کی دشواری ختم ہوجاتی ہے پریشانی نہیں ہوتی 

ਪ੍ਰਭ ਕਾ ਸਿਮਰਨੁ ਸਾਧ ਕੈ ਸੰਗਿ 
 parabh kaa simran saaDh kai sang.
The meditative remembrance of God prevails in the Company of the Holy.
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਗੁਰਮਖਿ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ (ਮਿਲਦਾ ਹੈ); 
پربھ کا سِمرنُ سادھ کےَ سنّگِ
سادھ کے سنگ۔ پاکدامن خدارسیدہ خزانے
خدا کی پاکدامن اور کی صحبت وقربت میں یاد آتی ہے

ਸਰਬ ਨਿਧਾਨ ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਰੰਗਿ 
sarab niDhaan naanak har rang. ||2||
O’ Nanak, all treasures of the world are in the Love of God. ||2||
ਹੇ ਨਾਨਕਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੇ ਪਿਆਰ ਵਿਚ ਹੀ (ਦੁਨੀਆ ਦੇਸਾਰੇ ਖ਼ਜ਼ਾਨੇ ਹਨ
سرب نِدھان نانک ہرِ رنّگِ
۔ ہر رنگ۔ الہٰی پیار میں۔ الہٰی عشق میں
اور اس یاد میں ہی اے نانک دنیا کی تمام دولت ہے ۔

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਰਿਧਿ ਸਿਧਿ ਨਉ ਨਿਧਿ 
parabh kai simran riDh siDh na-o niDh.
In the remembrance of God are the miraculous powers and all the nine treasures of the world.
ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਸਿਮਰਨ ਵਿਚ (ਹੀਸਾਰੀਆਂ ਰਿੱਧੀਆਂ ਸਿੱਧੀਆਂ ਤੇ ਨੌ ਖ਼ਜ਼ਾਨੇ ਹਨ, 
پربھ کےَ سِمرن رِدھِ سِدھِ نءُ نِدھِ
سمرن ۔ یاد خدا۔ عبادت ۔ ریاضت ۔ ردھ ۔ قت قلب۔ سدھ ۔ اخلاقی ۔ پاکیزگی ۔ نوندھ ۔ دنیا کے مانے ہوئے نو خزانے ۔ 
الہٰی بندگی ۔ عبادت وریاضت سے روحانیت کی بلندی عظمت پاکیزگی اور دنیاوی دولت کے نو خزانے ہے

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਗਿਆਨੁ ਧਿਆਨੁ ਤਤੁ ਬੁਧਿ 
parabh kai simran gi-aan Dhi-aan tat buDh.
In the remembrance of God are knowledge, meditation and the essence of wisdom.
ਪ੍ਰਭਸਿਮਰਨ ਵਿਚ ਹੀ ਗਿਆਨਸੁਰਤ ਦਾ ਟਿਕਾਉ ਤੇ ਜਗਤ ਦੇ ਮੂਲ (ਹਰੀਦੀ ਸਮਝ ਵਾਲੀ ਬੁੱਧੀ ਹੈ 
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ گِیانُ دھِیانُ تتُ بُدھِ
اصلیت ۔ بنانے عالم ۔ بدھ۔ ہوش۔ عقل ۔ سمجھ ۔
۔ الہٰی یاد ۔ عقل علم ۔ توجہات وہوش و ہواس کی مرکوزئت ہے

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਜਪ ਤਪ ਪੂਜਾ 
parabh kai simran jap tap poojaa.
In the remembrance of God are chanting, intense meditation and devotional worship.
ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਸਿਮਰਨ ਵਿਚ ਹੀ (ਸਾਰੇਜਾਪ ਤਾਪ ਤੇ (ਦੇਵ-) ਪੂਜਾ ਹਨ,
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ جپ تپ پۄُجا
خدا کی یاد میں مراقبہ اور عقیدت والی عبادت کی جاتی ہے

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਬਿਨਸੈ ਦੂਜਾ 
parabh kai simran binsai doojaa.
In the remembrance of God, duality vanishes.
ਸਾਹਿਬ ਨੂੰ ਚੇਤੇ ਕਰਨ ਦੁਆਰਾ ਦਵੈਤਭਾਵ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ بِنسےَ دۄُجا
مٹتا ہے ۔ دوجا ۔ دوئش۔ دگر
الہٰی یاد ہی سے دوئی دئوش مٹ جاتی ہے اور خدا کے کسی ہستی کے ثانی ہونیکا خیال ختم ہوجاتا ہے

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਤੀਰਥ ਇਸਨਾਨੀ 
parabh kai simran tirath isnaanee.
In the remembrance of God are purifying baths at sacred shrines of pilgrimage.
ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਵਾਲਾ (ਆਤਮ-) ਤੀਰਥ ਦਾ ਇਸ਼ਨਾਨ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੋ ਜਾਈਦਾ ਹੈ,
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ تیِرتھ اِسنانی
۔ تیرتھ ۔ اشنانی ۔ زیارت کار۔
الہٰی یاد سے اسنانی قلب او ر روح پاک ہوجاتی ہے ۔ جس سے انسانزیارت کار ہو جاتا ہے ۔ یا زیارت کرنے کے لئے برابر ہوجاتا ہے

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਦਰਗਹ ਮਾਨੀ 
parabh kai simran dargeh maanee.
In the remembrance of God, one attains honor in the Court of the God.
ਸਾਹਿਬ ਨੂੰ ਚੇਤੇ ਕਰਨ ਦੁਆਰਾ ਦਰਗਾਹ ਵਿਚ ਇੱਜ਼ਤ ਮਿਲਦੀ ਹੈ;
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ درگہ مانی
دگہ مانی ۔ دربار میں عزت۔ وقار۔
الہٰی یاد سے در بار میں جو کچھ ہو رہا ہے ۔ نیک اور اچھا ہونا معلوم ہوتا ہے

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਹੋਇ ਸੁ ਭਲਾ 
parabh kai simran ho-ay so bhalaa.
In the remembrance of God, one accepts His will to be good for all.
ਸਾਹਿਬ ਨੂੰ ਚੇਤੇ ਕਰਨ ਦੁਆਰਾ ਜਗਤ ਵਿਚ ਜੋ ਹੋ ਰਿਹਾ ਹੈ ਭਲਾ ਪ੍ਰਤੀਤ ਹੁੰਦਾ ਹੈ, 
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ ہۄءِ سُ بھلا
بھلا ۔ نیک ۔
خدا کی یاد میں ، ایک شخص اس کی مرضی کو قبول کرتا ہے کہ وہ سب کے لئے اچھا ہو

ਪ੍ਰਭ ਕੈ ਸਿਮਰਨਿ ਸੁਫਲ ਫਲਾ 
parabh kai simran sufal falaa.
By remembering God, one one succeeds in achieving the supreme goal of life.
ਸਾਹਿਬ ਨੂੰ ਚੇਤੇ ਕਰਨ ਦੁਆਰਾ ਮਨੁੱਖਜਨਮ ਦਾ ਉੱਚਾ ਮਨੋਰਥ ਸਿੱਧ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
پ٘ربھ کےَ سِمرنِ سُپھل پھلا
سپھل۔ کامیاب ۔ پھلا۔ برآور ۔ سپھل پھلا ۔ برآور کامیابی
۔ اور انسانی زندگی کا بلند ترین مدعا و مقصد حاصل ہوجاتا ہے

ਸੇ ਸਿਮਰਹਿ ਜਿਨ ਆਪਿ ਸਿਮਰਾਏ 
say simrahi jin aap simraa-ay.
They alone remember Him in meditation, whom He inspires to do so.
(ਨਾਮਉਹੀ ਸਿਮਰਦੇ ਹਨਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪਿ ਪ੍ਰੇਰਦਾ ਹੈ,
سے سِمرہِ جِن آپِ سِمراۓ
۔ مگر یاد الہٰی وہی کرتے ہیں جن سے خدا خود کرواتا ہے