Urdu-Page-244

ਹਰਿ ਗੁਣ ਸਾਰੀ ਤਾ ਕੰਤ ਪਿਆਰੀ ਨਾਮੇ ਧਰੀ ਪਿਆਰੋ 
har gun saaree taa kant pi-aaree naamay Dharee pi-aaro.
The soul-bride who imbues herself with the love of God and enshrines God’s virtues in her heart, becomes dear to the Master-God.
ਜੋ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਵਿਚ ਪਿਆਰ ਪਾਂਦੀ ਹੈ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਸੰਭਾਲਦੀ ਹੈ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੀ ਪਿਆਰੀ ਬਣ ਜਾਂਦੀ ਹੈ
    ہرِ   گُنھ  ساریِ  تا   کنّت  پِیاریِ  نامے   دھریِ  پِیارو  
ساری ۔ بسائے ۔ نام ۔ الہٰی نام۔ سچ  حق و حقیقت ۔
جو انسان الہٰی اوصاف دل میں بساتاہے ۔ سچ سچائی اور نام الہٰی سے  پیار کرتا ہے ۔

ਨਾਨਕ ਕਾਮਣਿ ਨਾਹ ਪਿਆਰੀ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਗਲਿ ਹਾਰੋ 
naanak kaaman naah pi-aaree raam naam gal haaro. ||2||
O’ Nanak, that soul-bride becomes dear to God who remains so absorbed in remembering Him as if she is wearing the rosary of God’s Name.
ਹੇ ਨਾਨਕਜਿਸ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਦੇ ਗਲ ਵਿਚ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮਹਾਰ ਪਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈਉਹ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਪ੍ਰਭੂ  ਦੀ ਪਿਆਰੀ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ 
    نانک   کامنھِ  ناہ  پِیاریِ   رام  نامُ  گلِ   ہارو  
کامن۔ عورت۔ انسان۔ ناہ ۔ خدا۔ گل ہارو۔ گلے کی مالا یا ہار ۔
اے نانک وہ خدا کا  پیارا معشو ق ہوجاتا ہے ۔ اور الہٰی نام اس کے گلے کی تسبح  بن جاتا ہے ۔

ਧਨ ਏਕਲੜੀ ਜੀਉ ਬਿਨੁ ਨਾਹ ਪਿਆਰੇ 
Dhan aykalrhee jee-o bin naah pi-aaray.
O’ my mind, the soul-bride who is lonely without her beloved Husband-God,
ਹੇ ਜੀਉਜੇਹੜੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਪਿਆਰੇ ਪਤੀਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਇਕੱਲੀ (ਸੁੰਞਾ ਜੀਵਨ ਬਿਤੀਤ ਕਰ ਰਹੀਹੈ,
    دھن   ایکلڑیِ  جیِءُ  بِنُ   ناہ  پِیارے  
ناہ ۔ خدا۔
انسانی زندگی خدا کے بغیر اکیلے پن والی اور سنسان ہے ۔

ਦੂਜੈ ਭਾਇ ਮੁਠੀ ਜੀਉ ਬਿਨੁ ਗੁਰ ਸਬਦ ਕਰਾਰੇ 
doojai bhaa-ay muthee jee-o bin gur sabad karaaray.
is being deluded by the love of duality without the support of the Guru’s word.
ਉਹ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸਹਾਰਾ ਦੇਣ ਵਾਲੇ ਸ਼ਬਦ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਹੋਰ ਹੋਰ ਪਿਆਰ ਵਿਚ ਠੱਗੀ ਜਾ ਰਹੀ ਹੈ
    دوُجےَ   بھاءِ  مُٹھیِ  جیِءُ   بِنُ  گُر  سبد   کرارے  
دوبے ۔ دولت۔ دوسروں سے محبت۔ بھائے ۔ پیار۔ مٹھی ۔ لٹ گئی ۔ سبد۔ سبق ۔ کلام۔
دنیاوی دولت کی محبت میں لٹ جاتی ہے ۔

ਬਿਨੁ ਸਬਦ ਪਿਆਰੇ ਕਉਣੁ ਦੁਤਰੁ ਤਾਰੇ ਮਾਇਆ ਮੋਹਿ ਖੁਆਈ 
bin sabad pi-aaray ka-un dutar taaray maa-i-aa mohi khu-aa-ee.
She is lost in the love of worldly riches and without the loving word of the Guru,   no one can ferry her across the dreadful worldly ocean of vices.
ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਹੋਰ ਕੋਈ ਨਹੀਂ ਜੋ ਉਸ ਨੂੰ ਦੁੱਤਰ (ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘਾ ਸਕਦਾ ਹੈਉਹ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ (ਫਸੀਖ਼ੁਆਰ ਹੁੰਦੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ l
    بِنُ   سبد  پِیارے  کئُنھُ   دُترُ  تارے  مائِیا   موہِ  کھُیائیِ  
وتر۔ دشوار گذار۔ کھوائی ۔ ذلیل و خوار ۔
جب تک اس نے سبق و کلام مرشد حاصل  نہ کیا ہو بغیر سبق و کلام مرشد کے اس دشوار گذار زندگی کو کیسے عبور  ہوگا ۔ دنیاوی دولت کی محبت می ذلیل و خوار ہوگا ۔

ਕੂੜਿ ਵਿਗੁਤੀ ਤਾ ਪਿਰਿ ਮੁਤੀ ਸਾ ਧਨ ਮਹਲੁ  ਪਾਈ 
koorh vigutee taa pir mutee saa Dhan mahal na paa-ee.
Ruined by falsehood, she is deserted by her Husband-God. Such a soul-bride can not realize Him.
ਜੋ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ (ਮਾਇਆ ਦੇਝੂਠੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਖ਼ੁਆਰ ਹੁੰਦੀ ਹੈਤਦੋਂ (ਜਾਣੋ ਕਿਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਵਲੋਂ ਉਹ ਛੁੱਟੜ ਹੋਈ ਪਈ ਹੈਉਹ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਪਰਮਾਤਮਾਪਤੀ ਦਾ ਟਿਕਾਣਾ ਨਹੀਂ ਲੱਭ ਸਕਦੀ
    کوُڑِ   ۄِگُتیِ  تا  پِرِ   مُتیِ  سا  دھن   مہلُ  ن  پائیِ  
پر ۔ خاوند۔ متی ۔ طلاقی ۔ چھوڑی  ہوئی ۔ محل۔ منزل۔ مقصد۔
جھوٹ کی خواری و ذلالت میں انسان منزل مقصود  حاصلنہیں کر سکتا ۔ وہ خدا کا چھوڑا ہوا طلاقی شدہ ہوجاتا ہے ۔

ਗੁਰ ਸਬਦੇ ਰਾਤੀ ਸਹਜੇ ਮਾਤੀ ਅਨਦਿਨੁ ਰਹੈ ਸਮਾਏ 
gur sabday raatee sehjay maatee an-din rahai samaa-ay.
But the one who is imbued with the Guru’s word in equipoise, always remains absorbed in God’s love.
(ਪਰਜੇਹੜੀ ਜੀੜਇਸਤ੍ਰੀ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਵਿਚ ਰੰਗੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈਉਹ ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ ਵਿਚ ਮਸਤ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈਉਹ ਹਰ ਵੇਲੇ (ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚਲੀਨ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ 
    گُر   سبدے  راتیِ  سہجے   ماتیِ  اندِنُ  رہےَ   سماۓ  
سہجے ۔ سکون میں۔ ماتی ۔ مخمور ۔ مست
مگر جس کے دل میں سبق مرشد کا کلام مرشد بسائیا ہوا ہوتا ہے ۔ خدا خود اسے  اپنے ساتھ ملائے رکھتا ہے ۔

ਨਾਨਕ ਕਾਮਣਿ ਸਦਾ ਰੰਗਿ ਰਾਤੀ ਹਰਿ ਜੀਉ ਆਪਿ ਮਿਲਾਏ 
naanak kaaman sadaa rang raatee har jee-o aap milaa-ay. ||3||
O Nanak, that soul-bride who always remains imbued in God’s Love, God Himself unites her with Himself. (3)
ਹੇ ਨਾਨਕਉਹ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਸਦਾ (ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੇਪ੍ਰੇਮਰੰਗ ਵਿਚ ਰੰਗੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈਉਸ ਨੂੰ ਪਰਮਾਤਮਾ ਆਪ (ਆਪਣੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚਮਿਲਾਈ ਰੱਖਦਾ ਹੈ 
    نانک   کامنھِ  سدا  رنّگِ   راتیِ  ہرِ  جیِءُ   آپِ  مِلاۓ   
نانک ، وہ روح دلہن جو ہمیشہ خدا کی محبت میں رنگین رہتی ہے ، خدا خود اس کو اپنے ساتھ جوڑ دیتا ہے

ਤਾ ਮਿਲੀਐ ਹਰਿ ਮੇਲੇ ਜੀਉ ਹਰਿ ਬਿਨੁ ਕਵਣੁ ਮਿਲਾਏ 
taa milee-ai har maylay jee-o har bin kavan milaa-ay.
O’ my mind, we unite with God only if He Himself unites us with Him. Besides God, who else can unite us with Him?
ਹੇ ਜੀਉ! (ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚਤਦੋਂ ਹੀ ਮਿਲ ਸਕੀਦਾ ਹੈਜੇ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪ ਹੀ ਮਿਲਾ ਲਏ ਪਰਮਾਤਮਾ ਤੋਂ ਬਿਨਾ (ਉਸ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਵਿਚਹੋਰ ਕੌਣ ਮਿਲਾ ਸਕਦਾ ਹੈ?
    تا   مِلیِئےَ  ہرِ  میلے   جیِءُ  ہرِ  بِنُ   کۄنھُ  مِلاۓ  
الہٰی ملاپ تبھی حاصل ہو سکتیا ہے اگر خدا خو د ملاتا ہے خدا کےبغیر کون ملاپ کر اسکتا ہے  ۔

ਬਿਨੁ ਗੁਰ ਪ੍ਰੀਤਮ ਆਪਣੇ ਜੀਉ ਕਉਣੁ ਭਰਮੁ ਚੁਕਾਏ 
bin gur pareetam aapnay jee-o ka-un bharam chukaa-ay.
Without our beloved Guru, who can dispel our doubt?
ਆਪਣੇ ਪ੍ਰੀਤਮ ਗੁਰੂ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਹੋਰ ਕੋਈ (ਸਾਡੇ ਮਨ ਦੀਭਟਕਣਾ ਨੂੰ ਦੂਰ ਨਹੀਂ ਕਰ ਸਕਦਾ
    بِنُ   گُر  پ٘ریِتم  آپنھے   جیِءُ  کئُنھُ  بھرمُ   چُکاۓ  
بھرم۔ وہم وگمان۔ دلی تشویش۔ چکائے ۔ دور کرئے ۔
پیارے مرشد کے بغیر کون انسانی دل کی بھٹکن تشویش اور وہم وگمان دور کر ستا ہے ۔

ਗੁਰੁ ਭਰਮੁ ਚੁਕਾਏ ਇਉ ਮਿਲੀਐ ਮਾਏ ਤਾ ਸਾ ਧਨ ਸੁਖੁ ਪਾਏ 
gur bharam chukaa-ay i-o milee-ai maa-ay taa saa Dhan sukh paa-ay.
O’ my mother, when the Guru removes our doubt, only then are we able to unite with God, and only then the soul bride enjoys peace.
ਹੇ ਮਾਂਜਦ ਗੁਰੂ  ਭਟਕਣਾ ਦੂਰ ਕਰ ਦੇਵੇਤਾਂ ਇਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਪ੍ਰਭੂਚਰਨਾਂ ਵਿਚ ਮਿਲ ਸਕੀਦਾ ਹੈਤਦੋਂ ਹੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦੀ ਹੈ
    گُرُ   بھرمُ  چُکاۓ  اِءُ   مِلیِئےَ  ماۓ  تا   سا  دھن  سُکھُ   پاۓ  
مرشد کے وہم وگمان متا دینے پر اگر لاپ ہو تبھی اے ماں سکون اور آرام   ملتا ہے ۔

ਗੁਰ ਸੇਵਾ ਬਿਨੁ ਘੋਰ ਅੰਧਾਰੁ ਬਿਨੁ ਗੁਰ ਮਗੁ  ਪਾਏ 
gur sayvaa bin ghor anDhaar bin gur mag na paa-ay.
Without following the Guru’s teachings, there is total spiritual darkness and without the Guru she can’t find the righteous way of living.
ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਣ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਅਨ੍ਹੇਰਘੁੱਪ ਹੈ, ਉਸ ਨੂੰ ਜੀਵਨ ਦਾ ਸਹੀ ਰਸਤਾ ਲੱਭ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ
    گُر   سیۄا  بِنُ  گھور   انّدھارُ  بِنُ  گُر   مگُ  ن  پاۓ  
گہور اندھار۔ گہیرا۔ اندھیرا۔ مگ۔ راستہ ۔
مرشد کے بغیر  روحانی زندگی بسر کرنے کے لئے  صراط مستقیم کا پتہ نہیں چلاتا ۔

ਕਾਮਣਿ ਰੰਗਿ ਰਾਤੀ ਸਹਜੇ ਮਾਤੀ ਗੁਰ ਕੈ ਸਬਦਿ ਵੀਚਾਰੇ 
kaaman rang raatee sehjay maatee gur kai sabad veechaaray.
The soul bride who follows the Guru’s word intuitively remains imbued with God’s love.
ਜੇਹੜੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਦੀ ਬਰਕਤਿ ਨਾਲ (ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੇ ਗੁਣਾਂ ਨੂੰਆਪਣੇ ਸੋਚਮੰਡਲ ਵਿਚ ਟਿਕਾਂਦੀ ਹੈਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਪ੍ਰੇਮਰੰਗ ਵਿਚ ਰੰਗੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈਤੇ ਆਤਮਕ ਅਡੋਲਤਾ ਵਿਚ ਮਸਤ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ
    کامنھِ   رنّگِ  راتیِ  سہجے   ماتیِ  گُر  کےَ   سبدِ  ۄیِچارے  
سبد وچارے ۔ سبق مرشد و کلام مرشد خوض کر نے سے ۔
جبتک انسانی الہٰی پریم پیار کے خما رمیں کلام مرشد کی سمجھ کرتا ہے ۔

ਨਾਨਕ ਕਾਮਣਿ ਹਰਿ ਵਰੁ ਪਾਇਆ ਗੁਰ ਕੈ ਭਾਇ ਪਿਆਰੇ 
naanak kaaman har var paa-i-aa gur kai bhaa-ay pi-aaray. ||4||1||
O’ Nanak, by enshrining love for the Guru, that bride-soul unites with her Husband-God. ||4||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਗੁਰੂ ਦੇ ਪ੍ਰੇਮ ਵਿਚ ਗੁਰੂ ਦੇ ਪਿਆਰ ਵਿਚ ਟਿਕਣ ਕਰਕੇ ਉਹ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪੈਂਦੀ ਹੈ l 
    نانک   کامنھِ  ہرِ  ۄرُ   پائِیا  گُر  کےَ   بھاءِ  پِیارے  
ہر ور ۔ خاوند  ۔ خداوند کریم ۔ گر کے بھائے پیارے ۔ مرشد کے پیار اور پریم کی وجہ سے ۔
اے نانک   مرشد کے پریم پیار سے اور اس کی برکات سے انسان  کا خدا سے ملاپ ہوجاتا ہے  ۔

ਗਉੜੀ ਮਹਲਾ  
ga-orhee mehlaa 3.
Raag Gauree, Third Guru:
    گئُڑیِ   مہلا  
ਪਿਰ ਬਿਨੁ ਖਰੀ ਨਿਮਾਣੀ ਜੀਉ ਬਿਨੁ ਪਿਰ ਕਿਉ ਜੀਵਾ ਮੇਰੀ ਮਾਈ 
pir bin kharee nimaanee jee-o bin pir ki-o jeevaa mayree maa-ee.
O’ my mother without my husband-God, I am truly without any honor, how can I spiritually survive without my Master-God?
ਹੇ ਮੇਰੀ ਮਾਂਪਤੀਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਮਿਲਾਪ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਮੇਰੀ ਜਿੰਦ ਬਹੁਤ ਕੰਗਾਲ ਜਿਹੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੇ ਮੇਲ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ  ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ
    پِر   بِنُ  کھریِ  نِمانھیِ   جیِءُ  بِنُ  پِر   کِءُ  جیِۄا  میریِ   مائیِ  
کھری ۔ نہایت ۔ زیادہ ۔ نمانی ۔ بغیر مان۔ بے وقار۔
اے ماں میں خدا کے بغیر نہایت بے وقار ہوں  اس کے بغیر میری زندگی بے معنی ہے اور روحانی نہیں۔

ਪਿਰ ਬਿਨੁ ਨੀਦ  ਆਵੈ ਜੀਉ ਕਾਪੜੁ ਤਨਿ  ਸੁਹਾਈ 
pir bin need na aavai jee-o kaaparh tan na suhaa-ee.
O’ my mother, without my husband-God, I do not find any peace and no dress provides comfort to my body.
(ਹੇ ਮਾਂ!) ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਤੋਂ ਬਿਨਾ ਮੇਰੇ ਅੰਦਰ ਸ਼ਾਂਤੀ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦੀਮੈਨੂੰ ਆਪਣੇ ਸਰੀਰ ਉਤੇ ਕੋਈ ਕੱਪੜਾ ਨਹੀਂ ਸੁਖਾਂਦਾ
    پِر   بِنُ  نیِد  ن   آۄےَ  جیِءُ  کاپڑُ   تنِ  ن  سُہائیِ   
پر ۔ خاوند۔ مراد خدا۔
خدا کے بغیر نہ جسمانی سکون ہے اور نہ بدن پر کپڑے اچھے لگتے ہیں۔

ਕਾਪਰੁ ਤਨਿ ਸੁਹਾਵੈ ਜਾ ਪਿਰ ਭਾਵੈ ਗੁਰਮਤੀ ਚਿਤੁ ਲਾਈਐ 
kaapar tan suhaavai jaa pir bhaavai gurmatee chit laa-ee-ai.
Any dress would look good on the soul-bride when she becomes pleasing to the husband-God by attuning to Him through the Guru’s teachings.
(ਹੇ ਮਾਂ!) ਕੱਪੜਾ ਸਰੀਰ ਉਤੇ ਤਦੋਂ ਸੁਖਾਂਦਾ ਹੈਜਦੋਂ ਮੈਂ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਭਾ ਜਾਵਾਂ l ਗੁਰੂ ਦੀ ਮਤਿ ਉਤੇ ਤੁਰਿਆਂਪ੍ਰਭੂ ਵਿਚ ਚਿੱਤ ਜੁੜਦਾ ਹੈ
    کاپرُ   تنِ  سُہاۄےَ  جا   پِر  بھاۄےَ  گُرمتیِ   چِتُ  لائیِئےَ  
کاپڑ۔ کپڑے ۔ تن۔ جسم۔ پرھ بھاوے ۔ خدا کو پسند آئے ۔
کپڑے جسم پر تبھی  سجتے ہیں اگر انسان کو خدا پیار کرئے اور سبق مرشد دل میں بستا ہو تبھی خدا سے محبت پیدا ہوتی ہے۔

ਸਦਾ ਸੁਹਾਗਣਿ ਜਾ ਸਤਿਗੁਰੁ ਸੇਵੇ ਗੁਰ ਕੈ ਅੰਕਿ ਸਮਾਈਐ 
sadaa suhaagan jaa satgur sayvay gur kai ank samaa-ee-ai.
When the soul bride follows the Guru’s teachings by dwelling in the holy congregation, she unites with husband-God forever.
ਜਦੋਂ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਗੁਰੂ ਦੀ ਗੋਦ ਵਿਚ ਹੀ ਟਿਕਕੇ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸਰਨ ਪੈਂਦੀ ਹੈਤਦੋਂ ਉਹ ਸਦਾ ਵਾਸਤੇ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲੀ ਬਣ ਜਾਂਦੀ ਹੈ  
    سدا   سُہاگنھِ  جا  ستِگُرُ   سیۄے  گُر  کےَ   انّکِ  سمائیِئےَ  
انگ ۔ گود۔
سچے مرشد کی خدمت سے انسان اور مرشدکی گود پاکر صدیوی  خوش قسمت ہوجاتاہے ۔

ਗੁਰ ਸਬਦੈ ਮੇਲਾ ਤਾ ਪਿਰੁ ਰਾਵੀ ਲਾਹਾ ਨਾਮੁ ਸੰਸਾਰੇ 
gur sabdai maylaa taa pir raavee laahaa naam sansaaray.
When through the Guru’s word, the soul-bride unites with her Husband God, then she enjoys His company. Naam is the only true wealth in this world.
ਜਦੋਂ ਗੁਰੂ– ਸ਼ਬਦ ਵਿਚ ਚਿੱਤ ਜੁੜਦਾ ਹੈਤਦੋਂ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪੈਂਦੀ  ਹੈ  ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਹੀ ਜਗਤ ਵਿਚ ਅਸਲ ਖੱਟੀ ਹੈ l
    گُر   سبدےَ  میلا  تا   پِرُ  راۄیِ  لاہا   نامُ  سنّسارے  
سبدے ۔ کلام کے ذریعے ۔ راوی  مل سکوں ۔ ہان۔ راوی ۔ مل۔ ملاپ ۔ لاہا۔ منافع۔
جب انسان کلام مرشد میں دل لگاتا ہے تب ہی الہٰی ملاپ حاصل ہوتا ہے ۔ الہٰی نعم یعنی سچ ہی یا حقیقت پرستی ہی اسل میں صبح اور اصل منافع  بخش ہے ۔

ਨਾਨਕ ਕਾਮਣਿ ਨਾਹ ਪਿਆਰੀ ਜਾ ਹਰਿ ਕੇ ਗੁਣ ਸਾਰੇ 
naanak kaaman naah pi-aaree jaa har kay gun saaray. ||1||
O, Nanak, the soul-bride becomrs loving to God only when she enshrines His virtues in her heart. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਜਦੋਂ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਗੁਣ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਵਸਾਂਦੀ ਹੈਤਦੋਂ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਨੂੰ ਪਿਆਰੀ ਲੱਗਣ ਲੱਗ ਪੈਂਦੀ ਹੈ l 
    نانک   کامنھِ  ناہ  پِیاریِ   جا  ہرِ  کے   گُنھ  سارے  
سارے ۔ سنبھالنا۔
اے نانک خدا کو انسان تبھی پیار الگتا ہے جب انسان الہٰی اوصاف دل میں بساتاہے ۔

ਸਾ ਧਨ ਰੰਗੁ ਮਾਣੇ ਜੀਉ ਆਪਣੇ ਨਾਲਿ ਪਿਆਰੇ 
saa Dhan rang maanay jee-o aapnay naal pi-aaray.
That soul-bride enjoys the bliss of the company of her beloved God,
ਉਹ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਆਪਣੇ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੇ ਮਿਲਾਪ ਵਿਚ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ ਮਾਣਦੀ ਹੈ,
    سا   دھن  رنّگُ  مانھے   جیِءُ  آپنھے  نالِ   پِیارے  
سادھن۔وہ عورت ۔
جو انسان کلام مرشد ذہن نشین کر لیتا ہے ۔

ਅਹਿਨਿਸਿ ਰੰਗਿ ਰਾਤੀ ਜੀਉ ਗੁਰ ਸਬਦੁ ਵੀਚਾਰੇ 
ahinis rang raatee jee-o gur sabad veechaaray.
who, imbued with God’s love, always reflects on the Guru’s word.
ਜੇਹੜੀ ਉਸ ਦੇ ਪਰੇਮ ਨਾਲ ਰੰਗੀ ਹੋਈ ਦਿਨ ਰਾਤ ਗੁਰਬਾਣੀ ਦਾ ਧਿਆਨ ਧਾਰਦੀ ਹੈ
    اہِنِسِ   رنّگِ  راتیِ  جیِءُ   گُر  سبدُ  ۄیِچارے   
اہنس۔ روز و شب۔ دن رات۔
وہ روز و شب الہٰی عشق میں مخمور  رہتا ہے ۔ اور الہٰی ملاپ میں روحانی سکون پاتا ہے ۔

ਗੁਰ ਸਬਦੁ ਵੀਚਾਰੇ ਹਉਮੈ ਮਾਰੇ ਇਨ ਬਿਧਿ ਮਿਲਹੁ ਪਿਆਰੇ 
gur sabad veechaaray ha-umai maaray in biDh milhu pi-aaray.
Contemplating the Guru’s word, she dispels her ego, and in this way she unites with her beloved God.
ਉਹ ਗੁਰਬਾਣੀ ਨੂੰ ਸੋਚਦੀ ਵਿਚਾਰਦੀ ਹੈਆਪਣੇ ਹੰਕਾਰ ਨੂੰ ਮੇਸ ਦਿੰਦੀ ਹੈ ਅਤੇ ਇਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਆਪਣੇ ਦਿਲਬਰ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪੈਦੀ ਹੈ
    گُر   سبدُ  ۄیِچارے  ہئُمےَ   مارے  اِن  بِدھِ   مِلہُ  پِیارے  
وچارے ۔ سمجھتی ہے ۔ ذہن نشین کرتی ہے ۔ ان بدھ۔ اس طور طریقے سے ۔ اس طرح ۔
اورکلام مرشد ذہن نشین ہونے کے کارن اس کی خودی مٹ جاتی ہے ۔ اس طور الہی ملاپ حاصل ہوتا ہے

ਸਾ ਧਨ ਸੋਹਾਗਣਿ ਸਦਾ ਰੰਗਿ ਰਾਤੀ ਸਾਚੈ ਨਾਮਿ ਪਿਆਰੇ 
saa Dhan sohagan sadaa rang raatee saachai naam pi-aaray.
That soul-bride is very fortunate, who is forever imbued with the Love of her beloved eternal God.
ਉਹ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਸਦਾ ਭਾਗਾਂ ਵਾਲੀ ਹੈਜੇਹੜੀ ਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਨਾਮ ਦੇ ਪ੍ਰੇਮਰੰਗ ਵਿਚ ਰੰਗੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈ l
    سا   دھن  سوہاگنھِ  سدا   رنّگِ  راتیِ  ساچےَ   نامِ  پِیارے  
رنگ ۔ پریم ۔ سوہاگن۔ خوش قسمت۔ ساپے ۔ نام۔ ساچے سچ ۔ حقیقت ۔
سچے نام سچ کے پیا ر سے صدیوی خوش باش خوش قسمت الہٰی عشق و پیار سے مخمور رہتا ہے ۔

ਅਪੁਨੇ ਗੁਰ ਮਿਲਿ ਰਹੀਐ ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਗਹੀਐ ਦੁਬਿਧਾ ਮਾਰਿ ਨਿਵਾਰੇ 
apunay gur mil rahee-ai amrit gahee-ai dubiDhaa maar nivaaray.
Remaining in the Company of our Guru, we obtain the ambrosial nectar of Naam which drives out our sense of duality.
ਆਪਣੇ ਗੁਰਾਂ ਦੀ ਸੰਗਤ ਅੰਦਰ ਵਸਣ ਦੁਆਰਾ ਅਸੀਂ ਆਤਮਕ ਜੀਵਨ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਨਾਮਜਲ ਗ੍ਰਹਿਣ ਕਰ ਲੈਂਦੇ ਹਾਂ ਅਤੇ ਆਪਣੀ ਦਵੈਤਭਾਵ ਨੂੰ ਨਾਸ ਕਰ ਪਰੇ ਸੁੱਟ ਪਾਉਂਦੇ ਹਾਂ
    اپُنے   گُر  مِلِ  رہیِئےَ   انّم٘رِتُ  گہیِئےَ  دُبِدھا   مارِ  نِۄارے  
گہئے  ۔ حاصل کریں ۔ دبھا ۔ دوچتی ۔ نوارے ۔ دور کرے ۔
اپنے مرشد کے ملاپ سے اپنے دل سے دوئی کتم گر کے ہی روحانی زندگی عنایت کرنے والا نام آب حیات  ملتا ہے

ਨਾਨਕ ਕਾਮਣਿ ਹਰਿ ਵਰੁ ਪਾਇਆ ਸਗਲੇ ਦੂਖ ਵਿਸਾਰੇ 
naanak kaaman har var paa-i-aa saglay dookh visaaray. ||2||
O’ Nanak, such a soul-bride has attained the union with her Husband-God, and has dispelled all her sorrows .
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਨੇ ਖਸਮਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਮਿਲਾਪ ਹਾਸਲ ਕਰ ਲਿਆਉਸ ਨੇ ਸਾਰੇ ਦੁੱਖ ਭੁਲਾ ਲਏਹਨ l
    نانک   کامنھِ  ہرِ  ۄرُ   پائِیا  سگلے  دوُکھ   ۄِسارے  
در۔ مالک۔
اے نانک جسے الہٰی وصل حاصل ہوگیا اس کے تمام عذاب مٹ گئے  (2)

ਕਾਮਣਿ ਪਿਰਹੁ ਭੁਲੀ ਜੀਉ ਮਾਇਆ ਮੋਹਿ ਪਿਆਰੇ 
kaaman pirahu bhulee jee-o maa-i-aa mohi pi-aaray.
The soul-bride who forgets her Husband-God, is lured into the love of Maya.
ਜੇਹੜੀ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਪ੍ਰਭੂਪਤੀ ਦੀ ਯਾਦ ਤੋਂ ਖੁੰਝ ਜਾਂਦੀ ਹੈਉਹ ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਫਸ ਜਾਂਦੀ ਹੈ l
    کامنھِ   پِرہُ  بھُلیِ  جیِءُ   مائِیا  موہِ  پِیارے   
کامن۔ عورت ۔ مراد ۔ انسان ۔ پر ہو۔ خاوند۔ مراد۔ کدا۔ مائیا موہ ۔ دنیاوی دولت کی محبت۔
خدا کو بھلا کر انسان دنیاوی دولت کی محبت میں گرفتار ہو جاتا ہے

ਝੂਠੀ ਝੂਠਿ ਲਗੀ ਜੀਉ ਕੂੜਿ ਮੁਠੀ ਕੂੜਿਆਰੇ 
jhoothee jhooth lagee jee-o koorh muthee koorhi-aaray.
The insincere soul bride is attached to falsehood and is deceived by false worldly attachments.
ਉਹ ਝੂਠੇ ਤੇ ਕੂੜੇ ਪਦਾਰਥਾਂ ਦੀ ਵਣਜਾਰਨ ਝੂਠੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਲੱਗੀ ਰਹਿੰਦੀ ਹੈਕੂੜੇ ਮੋਹ ਵਿਚ ਠੱਗੀ ਜਾਂਦੀ ਹੈ
    جھوُٹھیِ   جھوُٹھِ  لگیِ  جیِءُ   کوُڑِ  مُٹھیِ  کوُڑِیارے   
کوڑ ۔ کفر۔ جھوٹ۔ مٹھی ۔ لتی ۔ کوڑیارے ۔ جھوٹے نے ۔
وہ جھوٹ کی گرفت میں جھوٹے کو جھوٹ لوٹ لیتا ہے اور جھوٹا ہوجاتا ہے ۔

ਕੂੜੁ ਨਿਵਾਰੇ ਗੁਰਮਤਿ ਸਾਰੇ ਜੂਐ ਜਨਮੁ  ਹਾਰੇ 
koorh nivaaray gurmat saaray joo-ai janam na haaray.
The one who drives out her falsehood through the Guru’s teachings, does not lose in the game of life.
ਜੇਹੜੀ ਗੁਰੂ ਦੀ ਮਤਿ ਤੇ ਅਮਲ ਕਰਦੀ ਹੈਉਹ ਕੂੜ ਨੂੰ ਦੂਰ ਕਰਦੀ ਹੈਤੇ ਆਪਣਾ ਜਨਮ ਵਿਅਰਥ ਨਹੀਂ ਗਵਾਂਦੀ 
    کوُڑُ   نِۄارے  گُرمتِ  سارے   جوُئےَ  جنمُ  ن   ہارے  
گرمت۔ سبق مرشد۔ جنم ۔ زندگی ۔
سبق مرشد سے جھوٹ کو ختم کر نے سے یہ زندگی بیکار  نہیں گذرتی

ਗੁਰ ਸਬਦੁ ਸੇਵੇ ਸਚਿ ਸਮਾਵੈ ਵਿਚਹੁ ਹਉਮੈ ਮਾਰੇ 
gur sabad sayvay sach samaavai vichahu ha-umai maaray.
She follows the Guru’s teachings, dispels ego and unites with the eternal God
ਉਹ ਗੁਰੂ ਦੇ ਸ਼ਬਦ ਨੂੰ ਸੰਭਾਲਦੀ ਹੈਸਦਾਥਿਰ ਪ੍ਰਭੂ ਵਿਚ ਲੀਨ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਤੇ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰੋਂ ਹਉਮੈ ਨੂੰ ਮਾਰ ਮੁਕਾਂਦੀ ਹੈ 
    گُر   سبدُ  سیۄے  سچِ   سماۄےَ  ۄِچہُ  ہئُمےَ   مارے  
سچ سماوے ۔ سچ سچائی اور خدا اپنائے ۔
سبق اور کلام مرشد  کو زیر عمل لائے اور دل میں سچ اور حقیق بسائے

ਹਰਿ ਕਾ ਨਾਮੁ ਰਿਦੈ ਵਸਾਏ ਐਸਾ ਕਰੇ ਸੀਗਾਰੋ 
har kaa naam ridai vasaa-ay aisaa karay seegaaro.
She spiritually embellishes herself by enshrining God’s Name in her heart.
ਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਆਪਣੇ ਹਿਰਦੇ ਵਿਚ ਵਸਾ ਲੈਂਦੀ ਹੈਉਹ ਇਹੋ ਜਿਹਾ ਆਤਮਕ ਸਿੰਗਾਰ ਕਰਦੀ ਹੈ
    ہرِ   کا  نامُ  رِدےَ   ۄساۓ  ایَسا  کرے   سیِگارو  
سیگار۔ سجاوٹ۔ زیبائش ۔
اور خودی دل سے نکالے الہٰی دل مین بسائے اسیی زیبائش انسان  کے کرنے سے

ਨਾਨਕ ਕਾਮਣਿ ਸਹਜਿ ਸਮਾਣੀ ਜਿਸੁ ਸਾਚਾ ਨਾਮੁ ਅਧਾਰੋ 
naanak kaaman sahj samaanee jis saachaa naam aDhaaro. ||3||
O’ Nanak, such a soul-bride whose support is the Name of the eternal God, intuitively unites with God.
ਹੇ ਨਾਨਕ! ਜਿਸ ਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀ ਦਾ ਆਸਰਾ ਸੱਚਾ ਨਾਮ ਹੈਉਹ ਸੁਆਮੀ ਨਾਲ ਅਭੇਦ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ
    نانک   کامنھِ  سہجِ  سمانھیِ   جِسُ  ساچا  نامُ   ادھارو  
سہج سمانی ۔ روحانی سکون پاتا ہے ۔
اے نانک ۔ جسے سچے نام کا سہارا ہے روحانی سکون پاتاہے ۔

ਮਿਲੁ ਮੇਰੇ ਪ੍ਰੀਤਮਾ ਜੀਉ ਤੁਧੁ ਬਿਨੁ ਖਰੀ ਨਿਮਾਣੀ 
mil mayray pareetamaa jee-o tuDh bin kharee nimaanee.
O’ my beloved God, please meet me. Without You, I feel helpless.
ਹੇ ਮੇਰੇ ਪ੍ਰੀਤਮ ਪ੍ਰਭੂ ਜੀਮੈਨੂੰ ਮਿਲਤੈਥੋਂ ਬਿਨਾ ਮੈਂ ਬੁਹਤ ਆਜਿਜ਼ (ਨਿਮਾਣੀਹਾਂ 
    مِلُ   میرے  پ٘ریِتما  جیِءُ   تُدھُ  بِنُ  کھریِ   نِمانھیِ  
نمانی ۔ بے وقار۔ کھری ۔ نہایت ۔
اے خدا مجھے اپنا ملاپ عنایت ک فرما تیرے بغیر میں نہایت عاجز و لا چار ہون۔

ਮੈ ਨੈਣੀ ਨੀਦ  ਆਵੈ ਜੀਉ ਭਾਵੈ ਅੰਨੁ  ਪਾਣੀ 
mai nainee need na aavai jee-o bhaavai ann na paanee.
I am restless without You and I have no desire for food or water.
ਹੇ ਪ੍ਰੀਤਮ ਜੀਤੈਥੋਂ ਬਿਨਾ ਮੇਰੀਆਂ ਅੱਖਾਂ ਵਿਚ ਨੀਂਦ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦੀਮੈਨੂੰ ਨਾਹ ਅੰਨ ਚੰਗਾ ਲੱਗਦਾ ਹੈ ਨਾਹ ਪਾਣੀ
    مےَ   نیَنھیِ  نیِد  ن   آۄےَ  جیِءُ  بھاۄےَ   انّنُ  ن  پانھیِ   
بھاوے ۔ اچھا لگتا ۔
میں بے قرار اور بے چین ہوں نیند نہیں آتی نہ اناج اور پانی اچھا لگتا ہے ۔

ਪਾਣੀ ਅੰਨੁ  ਭਾਵੈ ਮਰੀਐ ਹਾਵੈ ਬਿਨੁ ਪਿਰ ਕਿਉ ਸੁਖੁ ਪਾਈਐ 
paanee ann na bhaavai maree-ai haavai bin pir ki-o sukh paa-ee-ai.
Yes, I have no desire for food or water and I am dying from the pain of separationWithout my husband God how can I be at peace
ਮੈਨੂੰ ਅੰਨ ਪਾਣੀ ਚੰਗਾ ਨਹੀਂ ਲੱਗਦਾਅਤੇ ਮੈਂ ਉਸ ਦੇ ਵਿਛੋੜੇ ਦੇ ਗ਼ਮ ਨਾਲ ਮਰ ਰਹੀ ਹਾਂ ਆਪਣੇ ਪਤੀ ਦੇ ਬਗ਼ੈਰ ਆਤਮਕ ਆਨੰਦ  ਕਿਸ ਤਰ੍ਹਾਂ ਮਿਲ ਸਕਦਾ ਹੈ?
    پانھیِ   انّنُ  ن  بھاۄےَ   مریِئےَ  ہاۄےَ  بِنُ   پِر  کِءُ  سُکھُ   پائیِئےَ  
ہاوے ۔ آہ وزاری۔ سکھداتا۔ سکھ دینے والا۔
آہ وزاری میں قریب المرگ ہوں خدا مالک کے بغیر کیسے روحانی سکون ملے   ۔