Urdu-PAGE-152

ਸਰਮਸੁਰਤਿਦੁਇਸਸੁਰਭਏ
saram suratdu-ay sasur bha-ay.
Hard work and heigher concious are my mother-in-law and father-in-law;
ਉੱਦਮਅਤੇਉੱਚੀਸੁਰਤਦੋਨੋਮੇਰੇਸੱਸਤੇਸਹੁਰਾਹੋਗਏਹਨ
سرم  سُرتِ  دُءِ  سسُر  بھۓ
شائستگی ، عاجزی اور بدیہی فہمی میری ساس اور ساس ہیں

ਕਰਣੀਕਾਮਣਿਕਰਿਮਨਲਏ
karnee kaaman kar man la-ay. ||2||
I have made good deeds my spouse.
ਚੰਗੇਅਮਲਾਨੂੰਮੈਂਆਪਣੀਪਤਨੀਬਣਾਇਆਤੇਮੰਨਲਿਆਹੈ
کرݨی  کامݨِ  کرِ  من  لۓ
کرݨی۔ افعال، کامݨِ۔ شریک حیات
اچھے افعال کو  میں نے اپنا شریک حیات بنایا ہے

ਸਾਹਾਸੰਜੋਗੁਵੀਆਹੁਵਿਜੋਗੁ
saahaa sanjog vee-aahu vijog.
Union with the Saints is my wedding date, and detachment from the worldly affairs and union with God is my marriage.
ਸੰਤਾਂਦਾਮਿਲਾਪਮੇਰਾਸ਼ਾਦੀਦਾਸਾਹਾਹੈਅਤੇਦੁਨੀਆਂਨਾਲੋਂਟੁਟਜਾਣਾਮੇਰਾਅਨੰਦਕਾਰਜ
ساہا  سنّجۄگُ  ویِیاہُ  ویِجۄگُ
ویِیاہُ۔ شادی
 حضور کے ساتھ اتحاد میری شادی کی تاریخ ہے ، اور دنیا سے علیحدگی میری شادی ہے۔

ਸਚੁਸੰਤਤਿਕਹੁਨਾਨਕਜੋਗੁ
sach santat kaho naanak jog. ||3||3||
Nanak says, Truth is the child born of this Union.
ਨਾਨਕਜੀਆਖਦੇਹਨਐਸੇਮਿਲਾਪਤੋਂਸੱਚਦੀਸੰਤਾਨਮੇਰੇਪੈਦਾਹੋਈਹੈ
سچُ  سنّتتِ  کہُ  نانک  جۄگُ
نانک کہتے ہیں ، سچائی اس اتحاد کے نتیجے  میں پیدا ہونے والا بچہ ہے

ਗਉੜੀਮਹਲਾ੧
ga-orhee mehlaa 1.
Raag Gauree, First Guru:
گئُڑی  محلا 1

ਪਉਣੈਪਾਣੀਅਗਨੀਕਾਮੇਲੁ
pa-unai paanee agnee kaa mayl.
When the air, water and fire unite, then this body is created,
ਜਦੋਂਹਵਾਪਾਣੀਅੱਗ (ਆਦਿਕਤੱਤਾਂਦਾਮਿਲਾਪਹੁੰਦਾਹੈਤਦੋਂਇਹਸਰੀਰਬਣਦਾਹੈ,
پئُݨےَ  پاݨی   اگنی  کا  میلُ
پئُݨے۔ہوا، پاݨی۔ پانی، اگنی۔ آگ
ہوا ، پانی اور آگ کا اتحاد

ਚੰਚਲਚਪਲਬੁਧਿਕਾਖੇਲੁ
chanchal chapal buDh kaa khayl.
and the game of mercurial and wandering intellect starts within it.
ਤੇਇਸਵਿਚਚੰਚਲਅਤੇਕਿਤੇਇੱਕਥਾਂਨਾਹਟਿਕਣਵਾਲੀਬੁੱਧੀਦੀਦੌੜਭੱਜਸ਼ੁਰੂਹੋਜਾਂਦੀਹੈ
چنّچل  چپل  بُدھِ  کا  کھیلُ
جسم چکناہٹ اور مستحکم عقل کا کھیل ہ

ਨਉਦਰਵਾਜੇਦਸਵਾਦੁਆਰੁ
na-odarvaajay dasvaa du-aar.
It has nine doors (or openings, such as eyes, ears, etc.), which are apparent.There is the tenth unseen door which can lead to supreme spiritual state 
ਇਸਦੇਨੌਬੂਹੇਹਨ (ਅੱਖਾਂਕੰਨਨੱਕਮੂੰਹਆਦਿਕਹਨ), ਦਸਵਾਂਦੁਆਰਾਹੈਬੁੱਧੀਜਿਸਰਾਹੀਂਆਤਮਕਜੀਵਨਦੀਸੂਝਪੈਸਕਦੀਹੈ l
نءُ  دروازے  دسوا  دُیارُ
نءُ۔نو
اس کے نو دروازے ہیں ، اور پھر دسویں دروازہ ہ

ਬੁਝੁਰੇਗਿਆਨੀਏਹੁਬੀਚਾਰੁ
bujh ray gi-aanee ayhu beechaar. ||1||
O wise one, reflect upon this and understand it.  
ਹੇਆਤਮਕਜੀਵਨਦੀਸੂਝਵਾਲੇਮਨੁੱਖਇਹਗੱਲਸਮਝਲੈ l
بُجھُ  رے  گِیانی  ایہُ  بیِچارُ
گِیانی۔ عقلمند،بیِچار۔ غور کریں
اے عقلمند اس پر غور کریں اور اسے سمجھیں ، 

ਕਥਤਾਬਕਤਾਸੁਨਤਾਸੋਈ
kathtaa baktaa suntaa so-ee.
God pervading in all is the One who speaks, and listens to everything.
ਪਰਮਾਤਮਾਹੀ (ਹਰੇਕਜੀਵਵਿਚਵਿਆਪਕਹੋਕੇਬੋਲਣਵਾਲਾਹੈਸੁਣਨਵਾਲਾਹੈ,
کتھتا  بکتا   سُنتا  سۄئی
خداوند وہ ہے جو بولتا ، سکھاتا اور سنتا ہے

ਆਪੁਬੀਚਾਰੇਸੁਗਿਆਨੀਹੋਈਰਹਾਉ
aap beechaaray so gi-aanee ho-ee. ||1|| rahaa-o.
The one who reflects upon his own self is truly wise.
ਜਿਹੜਾਮਨੁੱਖਆਪਣੇਆਤਮਕਜੀਵਨਨੂੰਪੜਤਾਲਦਾਰਹਿੰਦਾਹੈਉਹਮਨੁੱਖਆਤਮਕਜੀਵਨਦੀਸੂਝਵਾਲਾਹੋਜਾਂਦਾਹੈ
آپُ  بیِچارے  سُ  گِیانی  ہۄئی     رہاءُ
بیِچارے۔ غور کرتا ہے
جو اپنے نفس پر غور کرتا ہے وہ واقعتا عقلمند ہوتا ہے     رہاءُ

ਦੇਹੀਮਾਟੀਬੋਲੈਪਉਣੁ
dayhee maatee bolai pa-un.
The body is dust; the wind speaks through it.(Upon death the dust merges with dust and air into air)
ਮਿੱਟੀਆਦਿਕਤੱਤਾਂਤੋਂਬਣੇਇਸਸਰੀਰਵਿਚਸੁਆਸਚੱਲਦਾਰਹਿੰਦਾਹੈ
دیہی  ماٹی  بۄلےَ  پئُݨُ
ماٹی۔مٹی خاک
جسم خاک ہے ہوا اس کے ذریعے بولتی ہے

ਬੁਝੁਰੇਗਿਆਨੀਮੂਆਹੈਕਉਣੁ
bujh ray gi-aanee moo-aa hai ka-un.
(When someone dies) Reflect on this, O wise one, who has died   
ਹੇਸਿਆਣੇਬੰਦੇਸੋਚਉਹਕੌਣਹੈਜੋਮਰਗਿਆਹੈ
بُجھُ  رے  گِیانی  مۄُیا  ہےَ  کئُݨُ
مۄُیا۔ مر گیا ہے
اے عقلمند سمجھو کہ جو مر گیا ہے 

ਮੂਈਸੁਰਤਿਬਾਦੁਅਹੰਕਾਰੁ
 moo-ee surat baad ahaNkaar.
Intellect attached to Maya, conflict and ego have died, 
ਇਹਅੰਤ੍ਰੀਵੀਗਿਆਤਲੜਾਈਝਗੜਾਤੇਹੰਕਾਰਹੈਜੋਮਰਗਏਹਨ,
مۄُئی  سُرتِ  بادُ  اہنّکارُ
مایا ، تنازعہ اور انا سے وابستہ عقل فوت ہوگئی ، اس کے ساتھ ہی

ਓਹੁਨਮੂਆਜੋਦੇਖਣਹਾਰੁ
oh na moo-aa jo daykhanhaar. ||2||
but the soul, which belongs to the One who cherishes all, does not die  
ਪਰਉਹ (ਆਤਮਾਨਹੀਂਮਰਦਾਜੋਸਭਦੀਸੰਭਾਲਕਰਨਵਾਲੇਪਰਮਾਤਮਾਦੀਅੰਸ਼ਹੈ l
اۄہُ  ن  مۄُیا  جۄ  دیکھݨہارُ
 دیکھݨہارُ۔ جو غور کرتا ہے
لیکن جو غور کرتا ہے وہ مرتا نہیں ہے

ਜੈਕਾਰਣਿਤਟਿਤੀਰਥਜਾਹੀ
jai kaarantat tirath jaahee.
The wealth of Naam, for the sake of which people journey to sacred shrines and holy rivers,    
ਜਿਸ (ਨਾਮਰਤਨਦੀਖ਼ਾਤਰਲੋਕਤੀਰਥਾਂਦੇਕੰਢੇਤੇਜਾਂਦੇਹਨ,
جےَ  کارݨِ  تٹِ  تیِرتھ  جاہی
کارݨِ۔ مقصد، تیِرتھ ۔ مقدس مقامات
اس مقصد کے لیئے آپ مقدس مقامات اور مقدس ندیوں کا سفر کرتے ہیں۔

ਰਤਨਪਦਾਰਥਘਟਹੀਮਾਹੀ
ratan padaarath ghat hee maahee.
that priceless Naam dwells within the heart.
ਉਹਕੀਮਤੀਰਤਨ (ਮਨੁੱਖਦੇਹਿਰਦੇਵਿਚਹੀਵੱਸਦਾਹੈ
رتن  پدارتھ  گھٹ  ہی  ماہی
لیکن یہ انمول زیور آپ کے اپنے دل میں ہے

ਪੜਿਪੜਿਪੰਡਿਤੁਬਾਦੁਵਖਾਣੈ
parh parh pandit baad vakhaanai.
A Pandit, reads endlessly and stirs up arguments and controversies,
ਪੰਡਿਤ (ਵੇਦਆਦਿਕਧਰਮਪੁਸਤਕਾਂਨੂੰਪੜ੍ਹਪੜ੍ਹਕੇਚਰਚਾਕਰਦਾਰਹਿੰਦਾਹੈ
پڑِ  پڑِ  پنّڈِتُ  بادُ  وکھاݨےَ
پنڈت ، مذہبی اسکالر ، لامتناہی پڑھتے اور پڑھتے ہیں۔ وہ دلائل اور تنازعات کھڑا کرتے ہیں ،

ਹਉਨਮੂਆਮੇਰੀਮੁਈਬਲਾਇ
ha-o na moo-aa mayree mu-ee balaa-ay.
I understand that (when my body dies) it is not
that I have died, but it is my demon (ignorant intellect) which has died.
 ਮੈਂਨਹੀਂਮਰਿਆ, ਸਗੋਂਮੇਰੀਮੁਸੀਬਤਲਿਆਉਣਵਾਲੀਅਗਿਆਨਤਾਰੂਪਚੁੜੇਲਮਰਗਈਹੈ
ہءُ  ن  مۄُیا  میری  مُئی  بلاءِ
میں نہیں مرا – میرے اندر کی بد طبع فوت ہوگئی ہے۔

ਓਹੁਨਮੂਆਜੋਰਹਿਆਸਮਾਇ
oh na moo-aa jo rahi-aa samaa-ay.
The One who is pervading everyone does not
die.
ਸਭਜੀਵਾਂਵਿਚਵਿਆਪਕਪਰਮਾਤਮਾਕਦੇਨਹੀਂਮਰਦਾ
اۄہُ  ن  مۄُیا  جۄ  رہِیا  سماءِ
جو ہر جگہ پھیل رہا ہے وہ کبھی نہیں مرتا

ਕਹੁਨਾਨਕਗੁਰਿਬ੍ਰਹਮੁਦਿਖਾਇਆ
kaho naanak gur barahm dikhaa-i-aa.
Says Nanak, the Guru has revealed to me the all pervading God,
ਨਾਨਕਆਖਦਾਹੈ– ਗੁਰੂਨੇਮੇਨੂੰਪਰਮਾਤਮਾਦਾਦਰਸ਼ਨਕਰਾਦਿੱਤਾਹੈ,
کہُ  نانک   گُرِ  ب٘رہمُ  دِکھائِیا
دِکھائِیا۔ انکشاف کیا
نانک کہتے ہیں ، گورو نے مجھ پر خدا کا انکشاف کیا ،

ਮਰਤਾਜਾਤਾਨਦਰਿਨਆਇਆ
martaa jaataa nadar na aa-i-aa. ||4||4||
and now none seems me to die or to be born.
ਅਤੇਹੁਣਮੈਨੂੰਕੋਈਵੀਮਰਦਾਅਤੇਜੰਮਦਾਮਲੂਮਨਹੀਂਹੁੰਦਾ
مرتا  جاتا   ندرِ  ن  آئِیا
اور اب میں دیکھ رہا ہوں کہ پیدائش یا موت جیسی کوئی چیز نہیں ہے

 ਗਉੜੀਮਹਲਾ੧ਦਖਣੀ
ga-orhee mehlaa 1 dakhnee.
Raag Gauree Dakhani, First Guru:
گئُڑی  محلا 1 دکھݨی

 ਸੁਣਿਸੁਣਿਬੂਝੈਮਾਨੈਨਾਉਤਾਕੈਸਦਬਲਿਹਾਰੈਜਾਉ
sun sun boojhai maanai naa-o. taa kai sad balihaarai jaa-o.
I dedicate myself to the one who again and again listens, reflects and believes in God’s Name.
ਮੈਂਉਸਤੋਂਸਦਾਸਦਕੇਜਾਂਦਾਹਾਂਜੋਰੱਬਦੇਨਾਮਨੂੰਲਗਾਤਾਰਸੁਣਦਾਸਮਝਦਾਤੇਉਸਉਤੇਭਰੋਸਾਧਾਰਦਾਹੈ,
سُݨِ  سُݨِ  بۄُجھےَ  مانےَ  ناءُ                   تا  کےَ  سد  بلِہارےَ  جاءُ
بلِہارےَ۔ قربان جاوں
میں ہمیشہ کے لئے اس پر قربان جاوں جو سنتا ہے اورغور سے  سنتا ہے ، جو نام کو سمجھتا اور مانتا ہے

 ਆਪਿਭੁਲਾਏਠਉਰਨਠਾਉ
aapbhulaa-ay tha-ur na thaa-o.
When God Himself leads one astray, then for him there is no other place for spiritual support.
ਜਿਸਮਨੁੱਖਨੂੰਪ੍ਰਭੂ (ਇਸਪਾਸੇਵਲੋਂਖੁੰਝਾਦੇਂਦਾਹੈਉਸਨੂੰਕੋਈਹੋਰ (ਆਤਮਕਸਹਾਰਾਨਹੀਂਮਿਲਸਕਦਾ
آپِ  بھُلاۓ   ٹھئُر  ن  ٹھاءُ
جب خداوند خود ہمیں گمراہ کرتا ہے تو ہمارے لئے کوئی اور آرام کی جگہ نہیں ہے۔(جب خدا خود کسی کو گمراہ کر دے تو پھر اسےکوئی ٹھکانہ نہیں ملتا)

 ਤੂੰਸਮਝਾਵਹਿਮੇਲਿਮਿਲਾਉ
tooN samjhaavahi mayl milaa-o. ||1||
O’ God, whom You Yourself impart understanding of the Guru’s teachings, You unite him with Yourself 
ਹੇਪ੍ਰਭੂਜਿਸਨੂੰਤੂੰਆਪਬਖ਼ਸ਼ੇਂਉਸਨੂੰਤੂੰਗੁਰੂਦੀਸਿੱਖਿਆਵਿਚਮੇਲਕੇਆਪਣੇਚਰਨਾਂਦਾਮਿਲਾਪਬਖ਼ਸ਼ਦਾਹੈਂ l
تۄُنّ  سمجھاوہِ   میلِ  مِلاءُ
آپ افہام و تفہیم فراہم کرتے ہیں ، اور آپ ہمیں اپنے اتحاد میں متحد کرتے ہیں

 ਨਾਮੁਮਿਲੈਚਲੈਮੈਨਾਲਿ
naam milai chalai mai naal.
O’ God, I pray that I be blessed with Naam, which shall go along with me in the end.
ਹੇਪ੍ਰਭੂਮੇਰੀਇਹੀਅਰਦਾਸਹੈਕਿਮੈਨੂੰਤੇਰਾਨਾਮਮਿਲਜਾਏਤੇਰਾਨਾਮਹੀਜਗਤਤੋਂਤੁਰਨਵੇਲੇਮੇਰੇਨਾਲਜਾਸਕਦਾਹੈ
نامُ  مِلےَ   چلےَ  مےَ  نالِ
مجھے وہ نام ملتا ہے ، جو آخر میں میرے ساتھ چلے گا

 ਬਿਨੁਨਾਵੈਬਾਧੀਸਭਕਾਲਿਰਹਾਉ
bin naavai baaDhee sabh kaal. ||1|| rahaa-o.
Without Naam, all are held in the grip of the fear of death.
ਨਾਮਦੇਬਗੈਰਸਾਰੇਮੌਤਦੇਸਹਮਨੇਨਰੜੇਹੋਏਹਨ l
بِنُ  ناوےَ   بادھی  سبھ  کالِ      رہاءُ
کالِ۔ موت
نام کے بغیر ، سب موت کی گرفت میں ہیں۔   رہاءُ

 ਖੇਤੀਵਣਜੁਨਾਵੈਕੀਓਟ
khaytee vanaj naavai kee ot.
just as farming or business is the support of our physical needs, similarly God’s Name is the support for our spiritual life. 
ਪਰਮਾਤਮਾਦੇਨਾਮਦਾਆਸਰਾ (ਇਸਤਰ੍ਹਾਂਲਵੋਜਿਸਤਰ੍ਹਾਂਖੇਤੀਨੂੰਵਣਜਨੂੰਆਪਣੇਸਰੀਰਕਨਿਰਬਾਹਦਾਸਹਾਰਾਬਣਾਂਦੇਹੋ
کھیتی  وݨجُ   ناوےَ  کی  اۄٹ
میری کھیتی باڑی اور میرا کاروبار نام کے تعاون سے ہے

 ਪਾਪੁਪੁੰਨੁਬੀਜਕੀਪੋਟ
paap punn beej kee pot.
One carries the seeds of sin and virtue together to the next life.
ਕੀਤਾਹੋਇਆਪਾਪਜਾਂਪੁੰਨਹਰੇਕਜੀਵਲਈਅਗਾਂਹਵਾਸਤੇਬੀਜਦੀਪੋਟਲੀਬਣਜਾਂਦਾਹੈ
پاپُ  پُنّنُ   بیِج  کی  پۄٹ
گناہ اور نیکی کے بیج ایک دوسرے کے ساتھ جکڑے ہوئے ہیں۔

 ਕਾਮੁਕ੍ਰੋਧੁਜੀਅਮਹਿਚੋਟ
kaam kroDh jee-a meh chot.
Those, whose soul is inflicted with the wounds of vices like lust and anger.
ਜਿਨ੍ਹਾਂਬੰਦਿਆਂਦੇਹਿਰਦੇਵਿਚਕਾਮਕ੍ਰੋਧਆਦਿਕਵਿਕਾਰਚੋਟਲਾਂਦਾਰਹਿੰਦਾਹੈ l
کامُ  ک٘رۄدھُ  جیء  مہِ  چۄٹ
جنسی خواہش اور غصہ روح کے زخم ہیں۔

 ਨਾਮੁਵਿਸਾਰਿਚਲੇਮਨਿਖੋਟ
naam visaar chalay man khot. ||2||
They forsake God’s Name and depart from here with evil thoughts in their minds.   
ਉਹਬੰਦੇਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਵਿਸਾਰਕੇਇਥੋਂਮਨਵਿਚ (ਵਿਕਾਰਾਂਦੀਖੋਟਲੈਕੇਹੀਤੁਰਪੈਂਦੇਹਨ
نامُ  وِسارِ   چلے  منِ  کھۄٹ
شریر لوگ نام کو بھول جاتے ہیں اور پھر چلے جاتے ہیں

 ਸਾਚੇਗੁਰਕੀਸਾਚੀਸੀਖ
saachay gur kee saachee seekh.
They who receive true teachings from the True Guru.
ਜਿਨ੍ਹਾਂਮਨੁੱਖਾਂਨੂੰਸੱਚੇਸਤਿਗੁਰੂਦੀਸੱਚੀਸਿੱਖਿਆਪ੍ਰਾਪਤਹੁੰਦੀਹੈ
ساچے  گُر  کی   ساچی  سیِکھ
سچے گرو کی تعلیمات سچی ہیں

 ਤਨੁਮਨੁਸੀਤਲੁਸਾਚੁਪਰੀਖ
tan man seetal saach pareekh.
They realize the eternal God. Their body and mind remain calm.
ਉਹਨਾਂਦਾਮਨਸ਼ਾਂਤਰਹਿੰਦਾਹੈਉਹਨਾਂਦਾਸਰੀਰਸ਼ਾਂਤਰਹਿੰਦਾਹੈ l ਉਹਸਦਾਕਾਇਮਰਹਿਣਵਾਲੇਪਰਮਾਤਮਾਨੂੰਪਛਾਣਲੈਂਦੇਹਨ l
تنُ  منُ  سیِتلُ   ساچُ  پریِکھ
حق سچ کے پارس کے ساتھ لگ کے تن من ٹھنڈے اور  سچے ہو چکے ہیں

 ਜਲਪੁਰਾਇਨਿਰਸਕਮਲਪਰੀਖ
jal puraa-in ras kamal pareekh.
 Their true test is, that their soul cannot survive without God’s Name, just as  the water-lily, or the lotus flower  cannot survive without water.   
ਉਹਨਾਂਦੀਪ੍ਰੀਖਿਆਇਹਹੈਕਿਜਿਵੇਂਪਾਣੀਦੀਚੌਪੱਤੀਜਿਵੇਂਪਾਣੀਦਾਕੌਲਫੁਲ (ਪਾਣੀਤੋਂਬਿਨਾਜੀਊਂਦੇਨਹੀਂਰਹਿਸਕਦੇਤਿਵੇਂਉਹਨਾਂਦੀਜਿੰਦਪ੍ਰਭੂਨਾਮਦਾਵਿਛੋੜਾਸਹਾਰਨਹੀਂਸਕਦੀ)
جل  پُرائِنِ   رس  کمل  پریِکھ
یہ حکمت کا اصل نشان ہے: وہ پانی سے للی کی طرح ، یا پانی پر کمل کی طرح جدا رہتا ہے۔

 ਸਬਦਿਰਤੇਮੀਠੇਰਸਈਖ
sabad ratay meethay ras eekh. ||3||
Imbued with the Guru’s Word, they become sweet, like the sugarcane juice. 
ਉਹਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਵਿਚਰੰਗੇਰਹਿੰਦੇਹਨਉਹਮਿੱਠੇਸੁਭਾਵਵਾਲੇਹੁੰਦੇਹਨਜਿਵੇਂਗੰਨੇਦੀਰਹੁਮਿੱਠੀਹੈ l 
سبدِ  رتے   میِٹھے  رس  ایِکھ
کلام خدا کی خوشنودی سے انسان گنے کے رس کی طرح میٹھا ہوجاتا ہے۔

 ਹੁਕਮਿਸੰਜੋਗੀਗੜਿਦਸਦੁਆਰ
hukam sanjogee garhdas du-aar.
it is according to their preordained destiny that they have been blessed with this body fortress with ten doors.  
ਪ੍ਰਭੂਦੇਹੁਕਮਵਿਚਪੂਰਬਲੇਕੀਤੇਕਰਮਾਂਦੇਸੰਸਕਾਰਾਂਅਨੁਸਾਰਇਸਦਸਦੁਆਰੀਸਰੀਰਕਿਲ੍ਹੇਵਿਚ.
حُکمِ  سنّجۄگی  گڑِ  دس  دُیار
خداوند کے حکم سے  جسم کے قلعے میں دس دروازے ہیں۔

 ਪੰਚਵਸਹਿਮਿਲਿਜੋਤਿਅਪਾਰ
panch vaseh mil jot apaar.
The Saints dwell there, together with the Divine Light of the Infinite God.  
ਸੰਤਜਨਅਪਾਰਪ੍ਰਭੂਦੇਜੋਤਿਨਾਲਮਿਲਕੇਵੱਸਦੇਹਨ
پنّچ  وسہِ   مِلِ  جۄتِ  اپار
پنّچ  وسہِ۔ پانچ جذبات
پانچ جذبات وہاں لامحدود آسمانی نور کے ساتھ رہتے ہیں

 ਆਪਿਤੁਲੈਆਪੇਵਣਜਾਰ
aaptulai aapay vanjaar.
God Himself is the wealth, and He Himself is the trader.   
(ਕਾਮਕ੍ਰੋਧਆਦਿਕਕੋਈਵਿਕਾਰਇਸਕਿਲ੍ਹੇਵਿਚਉਹਨਾਂਉੱਤੇਚੋਟਨਹੀਂਕਰਦਾਉਹਨਾਂਦੇਅੰਦਰਪ੍ਰਭੂਆਪ (ਨਾਮਵੱਖਰਬਣਕੇਵਣਜਿਆਜਾਰਿਹਾਹੈ,
آپِ  تُلےَ   آپے  وݨجار
خداوند خود سامان تجارت ہے ، اور خود سوداگر ہے

 ਨਾਨਕਨਾਮਿਸਵਾਰਣਹਾਰ
naanak naam savaaranhaar. ||4||5||
O Nanak, through Naam, God Himself embellishes the life of the Saints with the virtues.  
ਤੇਹੇਨਾਨਕ! (ਉਹਨਾਂਸੰਤਜਨਾਂਨੂੰਆਪਣੇਨਾਮਵਿਚਜੋੜਕੇ (ਆਪਹੀਉਹਨਾਂਦਾਜੀਵਨਸੁਚੱਜਾਬਣਾਂਦਾਹੈ
نانک  نامِ  سوارݨہار
اے نانک  رب کے نام کے ذریعہ ہی ہم مزین اور جوان ہوتے ہیں

 ਗਉੜੀਮਹਲਾ੧
ga-orhee mehlaa 1.
Raag Gauree, First Guru:
گئُڑی  محلا 1

ਜਾਤੋਜਾਇਕਹਾਤੇਆਵੈ

jaato jaa-ay kahaa tay aavai.
How can we know where (this soul) comes from?
ਇਹਕਿਵੇਂਸਮਝਆਵੇਕਿਜੀਵਾਤਮਾਕਿਥੋਂਆਉਂਦਾਹੈ,
جاتۄ  جاءِ   کہا  تے  آوےَ
ہمیں کیا معلوم کہ ہم کہاں سے آئے ہیں

 ਕਹਉਪਜੈਕਹਜਾਇਸਮਾਵੈ
kah upjai kah jaa-ay samaavai.
Where was is it created and with what does it ultimately merge?
ਉਹਕਿਥੋਂਪੈਦਾਹੋਇਆਹੈਅਤੇਉਹਕਿਥੇਜਾਕੇਲੀਨਹੋਜਾਂਦਾਹੈ?
کہ  اُپجےَ   کہ  جاءِ  سماوےَ
سماوےَ۔ ضم ہونا ہے
ہم کہاں سے پیدا ہوئے  اور ہم نے کہاں جانا ہے اور کس میں  ضم ہونا ہے

ਕਿਉਬਾਧਿਓਕਿਉਮੁਕਤੀਪਾਵੈ
ki-o baaDhi-o ki-o muktee paavai.
Why it has been bound by worldly ties, and how does it obtain emancipation?
ਉਹਕਿਸਤਰ੍ਹਾਂਜਕੜਿਆਜਾਂਦਾਹੈਅਤੇਕਿਸਤਰ੍ਹਾਂਕਲਿਆਨਨੂੰਪ੍ਰਾਪਤਹੁੰਦਾਹੈ?
کِءُ  بادھِئۄ   کِءُ  مُکتی  پاوےَ
مُکتی  پاوےَ۔ آزادی حاصل کرے
ہم کس طرح پابند ہیں ، اور ہم آزادی کیسے حاصل کرسکتے ہیں 

ਕਿਉਅਬਿਨਾਸੀਸਹਜਿਸਮਾਵੈ
ki-o abhinaasee sahj samaavai. ||1||
How can it intuitively merge in the immortal God?   
ਉਹਕਿਸਤਰਾਸੁਖੈਨਹੀਅਮਰਸੁਆਮੀਅੰਦਰਲੀਨਹੁੰਦਾਹੈ?     
کِءُ   ابِناسی  سہجِ  سماوےَ
ہم ابدی  رب میں آسانی کے ساتھ کیسے ضم ہوجائیں؟ 

ਨਾਮੁਰਿਦੈਅੰਮ੍ਰਿਤੁਮੁਖਿਨਾਮੁ
naam ridai amrit mukh naam.
The one in whose heart dwells nectar like Naam and who utters God’s Name,  
ਜਿਸਮਨੁੱਖਦੇਹਿਰਦੇਵਿਚਪਰਮਾਤਮਾਦਾਨਾਮਅੰਮ੍ਰਿਤਵੱਸਦਾਹੈਜੋਮਨੁੱਖਮੂੰਹੋਂਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਉਚਾਰਦਾਹੈ,
نامُ  رِدےَ   انّم٘رِتُ  مُکھِ  نامُ
جو دل اور زبان سے نام کا آب حیات پیتا ہے

ਨਰਹਰਨਾਮੁਨਰਹਰਨਿਹਕਾਮੁਰਹਾਉ
narhar naam narhar nihkaam. ||1|| rahaa-o.
like God becomes free from desire and hence free from worldly bonds.
ਉਹਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਲੈਕੇਪ੍ਰਭੂਵਾਂਗਕਾਮਨਾਰਹਿਤ (ਵਾਸਨਾਰਹਿਤਹੋਜਾਂਦਾਹੈ
نرہر  نامُ   نرہر  نِہکامُ             رہاءُ
وہ خدا کی طرح خواہشوں اور دنیاوی بندھنوں سے آزاد ہوجاتا ہے

ਸਹਜੇਆਵੈਸਹਜੇਜਾਇ
sehjay aavai sehjay jaa-ay.
The soul comes to the world according to natural law, and also departs according to natural law.
 
ਕਾਨੂਨਕੁਦਰਤਦੇਅਧੀਨਜੀਵਾਤਮਾਆਉਂਦਾਹੈਅਤੇਕਾਨੂਨਕੁਦਰਤਦੇਅਧੀਨਹੀਉਹਟੁਰਜਾਂਦਾਹੈ
سہجے  آوےَ   سہجے  جاءِ
روح فطری قانون کے مطابق دنیا میں آتی ہے ، اور فطری قانون کے مطابق ہی روانہ ہوجاتی ہے

ਮਨਤੇਉਪਜੈਮਨਮਾਹਿਸਮਾਇ
mantay upjai man maahi samaa-ay.
Due to the desires of the mind, one is born and ultimately merges into the mind itself.
ਮਨਦੀਆਂਖਾਹਿਸ਼ਾਂਤੋਂਉਹਪੈਦਾਹੋਇਆਹੈਅਤੇਮਨਅੰਦਰਹੀਉਹਲੀਨਹੋਜਾਂਦਾਹੈ
من  تے  اُپجےَ   من  ماہِ  سماءِ
ذہن سے ہماری تخلیق ہوتی ہے ، اور ذہن میں ہم جذب ہوتے ہیں

ਗੁਰਮੁਖਿਮੁਕਤੋਬੰਧੁਨਪਾਇ
gurmukh mukto banDh na paa-ay.
But the one who follows the Guru’s teachings remains free from the bonds of  desire, and no obstacles are put in one’s path to liberation .
گُرمُکھِ  مُکتۄ   بنّدھُ  ن  پاءِ
لیکن جو گرو کی تعلیمات پر عمل کرتا ہے وہ خواہش کے بندھن سے آزاد رہتا ہے ، اور آزادی کے راستے میں کوئی رکاوٹیں نہیںڈالی جاتی ہیں۔

ਸਬਦੁਬੀਚਾਰਿਛੁਟੈਹਰਿਨਾਇ
sabad beechaar chhutai har naa-ay. ||2||
By reflecting on the Guru’s word and by lovingly meditating on God’s Name, one is emancipated from the entanglements of desire.
ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਨੂੰਵਿਚਾਰਕੇਉਹਮਨੁੱਖਪ੍ਰਭੂਦੇਨਾਮਦੀਰਾਹੀਂਵਾਸਨਾ (ਦੇਜਾਲਵਿਚੋਂਬਚਜਾਂਦਾਹੈ
سبدُ  بیِچارِ   چھُٹےَ  ہرِ  ناءِ
گرو کے کلام پر غور کرنے اور محبت کے ساتھ خدا کے نام پر غور کرنے سے ، خواہشکے الجھنے سے نجات پائی جاتی ہے

 ਤਰਵਰਪੰਖੀਬਹੁਨਿਸਿਬਾਸੁ
tarvar pankhee baho nis baas.
Just as the birds come to sit in a tree at night, similarly mortals come to the world for a limited stay.
ਜਿਵੇਂਰਾਤਵੇਲੇਅਨੇਕਾਂਪੰਛੀਰੁੱਖਾਂਉੱਤੇਵਸੇਰਾਕਰਲੈਂਦੇਹਨਤਿਵੇਂਜੀਵਜਗਤਵਿਚਰੈਣਬਸੇਰੇਲਈਆਉਂਦੇਹਨ,
ترور  پنّکھی   بہُ  نِسِ  باسُ
جس طرح پرندے رات کے وقت درخت پر بیٹھنے آتے ہیں ، اسی طرح انسان بھی ایکمحدود قیام کے لئے دنیا میں آتے ہیں

ਸੁਖਦੁਖੀਆਮਨਿਮੋਹਵਿਣਾਸੁ
sukhdukhee-aa man moh vinaas.
While some are at peace, yet others are miserable due to the worldly attachment and spiritually they perish.
ਕੋਈਸੁਖੀਹਨਕੋਈਦੁਖੀਹਨਕਈਆਂਦੇਮਨਵਿਚਮਾਇਆਦਾਮੋਹਬਣਜਾਂਦਾਹੈਤੇਉਹਆਤਮਕਮੌਤਸਹੇੜਲੈਂਦੇਹਨ
سُکھ  دُکھیِیا   منِ  مۄہ  وِݨاسُ
جب کہ کچھ سکون میں ہیں ، پھر بھی دنیاوی لگاؤ کی وجہ سے دوسرے دکھی ہیں اور روحانی طور پر وہ فنا ہوجاتے ہیں

 ਸਾਝਬਿਹਾਗਤਕਹਿਆਗਾਸੁ
saajh bihaag takeh aagaas.
Just as the birds look to the sky at dawn and fly in different directions to seek their daily food.
ਜਿਵੇਂਸਵੇਰੇਉਹਪੰਛੀਅਕਾਸ਼ਨੂੰਤੱਕਦੇਹਨ (ਚਾਨਣਵੇਖਕੇਦਸੀਂਪਾਸੀਂਉੱਡਜਾਂਦੇਹਨ,
ساجھ  بِہاگ   تکہِ  آگاسُ
جس طرح پرندے فجر کے وقت آسمان کی طرف دیکھتے ہیں اور اپنا روز مرہ کا کھانا تلاش کرنے کے لئے مختلف سمتوں میں اڑتےہیں

ਦਹਦਿਸਿਧਾਵਹਿਕਰਮਿਲਿਖਿਆਸੁ
dahdis Dhaaveh karam likhi-aas. ||3||
Similarly the mortals go to earn their living according to their preordained destiny.
ਤਿਵੇਂਜੀਵਕੀਤੇਕਰਮਾਂਦੇਸੰਸਕਾਰਾਂਅਨੁਸਾਰਦਸੀਂਪਾਸੀਂਭਟਕਦੇਫਿਰਦੇਹਨ
دہ  دِسِ  دھاوہِ   کرمِ  لِکھِیاسُ
 لِکھِیاسُ۔ مقدر
اسی طرح بشر اپنے مقدر کے مطابق اپنی روزی کمانے جاتے ہیں