Urdu-Page-250

SGGS Page 250
 ਸਤਿਗੁਰ ਪ੍ਰਸਾਦਿ 
ik-oNkaar satgur parsaad.
One eternal God. Realized by the grace of the True Guru:
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਇੱਕ ਹੈ ਅਤੇ ਸਤਿਗੁਰੂ ਦੀ ਕਿਰਪਾ ਨਾਲ ਮਿਲਦਾ ਹੈ
 ستِگُر پ٘رسادِ 
ایک ابدی خدا۔ سچے گرو کے فضل سے محسوس ہوا

ਗਉੜੀ ਬਾਵਨ ਅਖਰੀ ਮਹਲਾ  
ga-orhee baavan akhree mehlaa 5.
Raag Gauree, Bavan Akhri 
(based on 52 letters of the Sanskrit alphabet), Fifth Guru:
  گئُڑیِ باۄن اکھریِ مہلا 
باون اکھری 52 حرفوں والی ۔
ਸਲੋਕੁ 
salok.
Salok: 
 سلوکُ 
ਗੁਰਦੇਵ ਮਾਤਾ ਗੁਰਦੇਵ ਪਿਤਾ ਗੁਰਦੇਵ ਸੁਆਮੀ ਪਰਮੇਸੁਰਾ 
gurdayv maataa gurdayv pitaa gurdayv su-aamee parmaysuraa.
The Guru is the spiritual mother, father and master and the embodiment of God. ਗੁਰੂ ਹੀ ਮਾਂ ਹੈਗੁਰੂ ਹੀ ਪਿਉ ਹੈ (ਗੁਰੂ ਹੀ ਆਤਮਕ ਜਨਮ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈ), ਗੁਰੂ ਮਾਲਕਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਰੂਪ ਹੈ
 گُردیۄ ماتا گُردیۄ پِتا گُردیۄ سُیامیِ پرمیسُرا 
مرشد ہی ماں ہے مرشد ہی باپ ہے کیونکہ مرشد ہی روحانی زندگی عنایت کرنے والا ہے مرشد ہی آقا الہٰی شکل و صورت والا ہے ۔ 


ਗੁਰਦੇਵ ਸਖਾ ਅਗਿਆਨ ਭੰਜਨੁ ਗੁਰਦੇਵ ਬੰਧਿਪ ਸਹੋਦਰਾ 
gurdayv sakhaa agi-aan bhanjan gurdayv banDhip sahodaraa.
The Guru is the friend, the destroyer of ignorance and the Guru is the relative and real brother.
ਗੁਰੂ (ਮਾਇਆ ਦੇ ਮੋਹ ਦਾਹਨੇਰਾ ਨਾਸ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਮਿੱਤਰ ਹੈਗੁਰੂ ਹੀ (ਤੋੜ ਨਿਭਣ ਵਾਲਾਸੰਬੰਧੀ ਤੇ ਭਰਾ ਹੈ l
 گُردیۄ سکھا اگِیان بھنّجنُ گُردیۄ بنّدھِپ سہودرا 
سکھا۔ ساتھی ۔ اگیان ۔ بھنجن۔ لا علمی دور کرنے والا۔ بندھپ ۔ رشتہ دار۔ سہودار ۔ بھائی۔
مرشد ہی ساتھی اور جہالت دور کرنے والا اور رشتہ دار تعلق دار اور مات زاد بھائی ہے ۔ 


ਗੁਰਦੇਵ ਦਾਤਾ ਹਰਿ ਨਾਮੁ ਉਪਦੇਸੈ ਗੁਰਦੇਵ ਮੰਤੁ ਨਿਰੋਧਰਾ 
gurdayv daataa har naam updaysai gurdayv mant niroDharaa.
The Guru is the real benefactor who bestows God’s Name. The Guru’s Mantra never becomes ineffective against vices.
ਗੁਰੂ ਅਸਲੀ ਦਾਤਾ ਹੈ ਜੋ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਉਪਦੇਸ਼ਦਾ ਹੈਗੁਰੂ ਦਾ ਮੰਤ੍ਰ ਐਸਾ ਹੈ ਜਿਸ ਦਾ ਅਸਰ ਕੋਈ ਵਿਕਾਰ ਆਦਿਕ ਗਵਾ ਨਹੀਂ ਸਕਦਾ 
  گُردیۄ داتا ہرِ نامُ اُپدیسےَ گُردیۄ منّتُ نِرودھرا 
منت ۔ سبق۔ نصیحت۔ نرودھرا۔ سچ اور عقل کی شکل و صورت ۔
مرشد سخی ہے جو الہٰی نام کا سبق دیتا ہے ۔ مرشد کا سبق ایسا ہے ۔ زائل نہیں ہوتا۔ 


ਗੁਰਦੇਵ ਸਾਂਤਿ ਸਤਿ ਬੁਧਿ ਮੂਰਤਿ ਗੁਰਦੇਵ ਪਾਰਸ ਪਰਸ ਪਰਾ 
gurdayv saaNt sat buDh moorat gurdayv paaras paras paraa.
The Guru is the Image of peace, truth and wisdom. The Guru’s touch is far superior than the touch of the mythical Philosopher’s Stone.
ਗੁਰੂ ਸ਼ਾਂਤੀ ਸੱਚ ਅਤੇ ਅਕਲ ਦਾ ਸਰੂਪ ਹੈਗੁਰੂ ਇਕ ਐਸਾ ਪਾਰਸ ਹੈ ਜਿਸ ਦੀ ਛੋਹ ਪਾਰਸ ਦੀ ਛੋਹ ਨਾਲੋਂ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਹੈ
 گُردیۄ ساںتِ ستِ بُدھِ موُرتِ گُردیۄ پارس پرس پرا 
پارس۔ جس کی چھوہ سے لوہا سونابن اجاتاہے ۔ پرس پر۔ چھوہ سے اوپر۔
مرشد سچ اور عقل کی شکل و صورت ہے ۔ مرشد ایک پارس ہے ۔ جس کی صحبت پارس سے بھی بہتر ہے ۔ 


ਗੁਰਦੇਵ ਤੀਰਥੁ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਸਰੋਵਰੁ ਗੁਰ ਗਿਆਨ ਮਜਨੁ ਅਪਰੰਪਰਾ 
gurdayv tirath amrit sarovar gur gi-aan majan apramparaaThe Guru’s teachings are the sacred shrine and bathing in the nectar of Guru’s teachings is much superior than bathing at the sacred shrine of pilgrimage.
ਗੁਰੂ ਸੱਚਾ ਤੀਰਥ ਹੈਅੰਮ੍ਰਿਤ ਦਾ ਸਰੋਵਰ ਹੈਗੁਰੂ ਦੇ ਗਿਆਨਜਲ ਦਾ ਇਸ਼ਨਾਨ ਸਾਰੇ ਤੀਰਥਾਂ ਦੇ ਇਸ਼ਨਾਨ ਨਾਲੋਂ ਬਹੁਤ ਹੀ ਸ੍ਰੇਸ਼ਟ ਹੈ
 گُردیۄ تیِرتھُ انّم٘رِت سروۄرُ گُر گِیان مجنُ اپرنّپرا 
مجن۔ اشنان ۔ اپر نپرا۔ پرے سے پرے ۔
مرشد ایک زیار گاہ ہے اور آب حیات کا تالاب ہے ۔ مرشد کےعلم کی زیارت ( سے ) نہایت بلند اہیت کی حاصل ہے ۔ مرشد الہٰی اہمیت رکھتا ہے ۔ 


ਗੁਰਦੇਵ ਕਰਤਾ ਸਭਿ ਪਾਪ ਹਰਤਾ ਗੁਰਦੇਵ ਪਤਿਤ ਪਵਿਤ ਕਰਾ 
gurdayv kartaa sabh paap hartaa gurdayv patit pavit karaa.
The Divine Guru is the Creator and the destroyer of all sins; the Divine Guru is the Purifier of sinners.
ਗੁਰੂ ਕਰਤਾਰ ਦਾ ਰੂਪ ਹੈਸਾਰੇ ਪਾਪਾਂ ਨੂੰ ਦੂਰ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈਗੁਰੂ ਵਿਕਾਰੀ ਬੰਦਿਆਂ (ਦੇ ਹਿਰਦੇਨੂੰ ਪਵਿੱਤਰ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹੈ 
 گُردیۄ کرتا سبھِ پاپ ہرتا گُردیۄ پتِت پۄِت کرا 
پتت پوت کر۔ گناہگاروں کو پاک بنانے والا ۔
جو سب بدکاریوں اور گناہوں کو دور کراتا ہے ۔ اور پاک صاف عادات کا حاصل بناتاہے ۔ 


ਗੁਰਦੇਵ ਆਦਿ ਜੁਗਾਦਿ ਜੁਗੁ ਜੁਗੁ ਗੁਰਦੇਵ ਮੰਤੁ ਹਰਿ ਜਪਿ ਉਧਰਾ 
gurdayv aad jugaad jug jug gurdayv mant har jap uDhraa.
The Guru existed from the primal beginning, through ages upon ages and by meditating on God through the Guru’s mantra, one is saved from the vices.
ਜਦੋਂ ਤੋਂ ਜਗਤ ਬਣਿਆ ਹੈ ਗੁਰੂ ਸ਼ੂਰੂ ਤੋਂ ਹੀ ਹਰੇਕ ਜੁਗ ਵਿਚ (ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਨਾਮ ਦਾ ਉਪਦੇਸ਼ਦਾਤਾਹੈ ਗੁਰੂ ਦਾ ਦਿੱਤਾ ਹੋਇਆ ਹਰਿਨਾਮ ਮੰਤ੍ਰ ਜਪ ਕੇ ਵਿਕਾਰਾਂ ਤੋਂ ਬਚ ਜਾਈਦਾ ਹੈ 
 گُردیۄ آدِ جُگادِ جُگُ جُگُ گُردیۄ منّتُ ہرِ جپِ اُدھرا 
منت۔ سبق۔ نصیحت ۔ ادھر۔ کامیابی ۔
جب سے عالم و جو د مین آیا ہے ۔ ہر زمانے میں مرشد کا عنایت کردہ نام کی ریاض سے انسان دنیاوی بدکاریوں اور گناہوں کے سمندر سے پار ہوکر زندگی کامیاب بنا لیتا ہے ۔ 


ਗੁਰਦੇਵ ਸੰਗਤਿ ਪ੍ਰਭ ਮੇਲਿ ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਹਮ ਮੂੜ ਪਾਪੀ ਜਿਤੁ ਲਗਿ ਤਰਾ 
gurdayv sangat parabh mayl kar kirpaa ham moorh paapee jit lag taraa.
O’ God, please bless us with the holy congregation so that by joining it we, the ignorant sinners, may also swim across the world-ocean of vices.
ਹੇ ਪ੍ਰਭੂਮਿਹਰ ਕਰਸਾਨੂੰ ਗੁਰੂ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਦੇਹਤਾ ਕਿ ਅਸੀਂ ਮੂਰਖ ਪਾਪੀ ਉਸ ਦੀ ਸੰਗਤਿ ਵਿਚ (ਰਹਿ ਕੇਤਰ ਜਾਈਏ 
 گُردیۄ سنّگتِ پ٘ربھ میلِ کرِ کِرپا ہم موُڑ پاپیِ جِتُ لگِ ترا 
اے خد مرشد کی صحبت و قربت عنایت فرماتا ہے کہ ہم نادان جاہل اس کی صحبت وقربت سے کامیاب ہوجائیں مرشد الہٰی شکل وصورت کاحاصل ہے اور زندگی کو کامیابی عنایت کرنے والا ہے ۔ 


ਗੁਰਦੇਵ ਸਤਿਗੁਰੁ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮੁ ਪਰਮੇਸਰੁ ਗੁਰਦੇਵ ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਨਮਸਕਰਾ 
gurdayv satgur paarbarahm parmaysar gurdayv naanak har namaskaraa. ||1||
O’ Nanak, The Guru is the embodiment of the supreme God, we should humbly bow to the Guru. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਗੁਰੂ ਪਰਮੇਸਰ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਦਾ ਰੂਪ ਹੈਹਰੀ ਦੇ ਰੂਪ ਗੁਰੂ ਨੂੰ ਸਦਾ ਨਮਸਕਾਰ ਕਰਨੀ ਚਾਹੀਦੀ ਹੈ 
 گُردیۄ ستِگُرُ پارب٘رہمُ پرمیسرُ گُردیۄ نانک ہرِ نمسکرا 
اس لئے اے نانک مرشد کو بطور تعظیم و آداب جھکنا اور سجدہ کرنا در کار ہے ۔ 


ਸਲੋਕੁ 
salok.
Salok:
 سلوکُ 
ਆਪਹਿ ਕੀਆ ਕਰਾਇਆ ਆਪਹਿ ਕਰਨੈ ਜੋਗੁ 
aapeh kee-aa karaa-i-aa aapeh karnai jog.
He Himself has created and accomplished everything in the universe and He Himself is capable to do everything.
ਸਾਰੀ ਜਗਤਰਚਨਾ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪ ਹੀ ਕੀਤੀ ਹੈਆਪ ਹੀ ਕਰਨ ਦੀ ਸਮਰੱਥਾ ਵਾਲਾ ਹੈ
 آپہِ کیِیا کرائِیا آپہِ کرنےَ جوگُ 
آپیہہ ۔ از خود۔
سارا عالم خدا کا خود کا کود پیدا کیا ہوا ہے اور خود پیدا کرنے کی توفیق رکھتا ہے ۔ 


ਨਾਨਕ ਏਕੋ ਰਵਿ ਰਹਿਆ ਦੂਸਰ ਹੋਆ  ਹੋਗੁ 
naanak ayko rav rahi-aa doosar ho-aa na hog. ||1||
O Nanak, the One God is pervading everywhere; there has never been any other and there never shall be. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਇਕ ਪ੍ਰਭੂ ਹਰਿ ਥਾਂ ਵਿਆਪਕ ਹੋ ਰਿਹਾ ਹੈ ਹੋਰ ਕੋਈ ਨਾਂ ਸੀ ਤੇ ਨਾਂ ਹੀ ਹੋਵੇਗਾ 
 نانک ایکو رۄِ رہِیا دوُسر ہویا ن ہوگُ 
رورہیا۔ حاضر ہے ۔ ہوگ۔ ہوگا۔ دوسر۔ دوسرا
اے نانک وہ سارے عالم مین خودہی بس رہا ہے ۔ اس کے علاوہ دوسری کوئی ہستی نہیں 


ਪਉੜੀ 
pa-orhee.
Pauree:
 پئُڑیِ 
پوڑی
ਓਅੰ ਸਾਧ ਸਤਿਗੁਰ ਨਮਸਕਾਰੰ 
o-aN saaDh satgur namaskaaraN.
ONG, I pay homage to the one God and the saintly true Guru.
ਓਅੰ ਹਿੰਦੀ ਦੀ ਵਰਨਮਾਲਾ ਦਾ ਪਹਿਲਾ ਅੱਖਰ ਮੈਂ ਇਕ ਵਾਹਿਗੁਰੂ ਅਤੇ ਸੰਤ ਸਰੂਪ ਸੱਚੇ ਗੁਰਾਂ ਨੂੰ ਬੰਦਨਾ ਕਰਦਾ ਹਾਂ!
 اوئنّ سادھ ستِگُر نمسکارنّ 
(1) اوا ۔ اول۔ سادھ۔ پادکامن۔ ستگر۔ سچا مرشد۔ نمسکار۔ سجدہ کرنا سر جھکانا۔
ہماری اسے سلام آداب اور جھکتےہیں جو خود ہی سچا مرشد اور پاکدامن ہے ۔ 


ਆਦਿ ਮਧਿ ਅੰਤਿ ਨਿਰੰਕਾਰੰ 
aad maDh ant niraNkaaraN.
The formless God was there in the beginning of the creation, is present now and will be there in the end.
ਆਕਾਰਰਹਿਤ ਪ੍ਰਭੂ ਜਗਤ ਦੇ ਸ਼ੁਰੂ ਵਿਚ ਭੀ ਆਪ ਹੀ ਸੀਹੁਣ ਭੀ ਆਪ ਹੀ ਹੈਜਗਤ ਦੇ ਅੰਤ ਵਿਚ ਭੀ ਆਪ ਹੀ ਰਹੇਗਾ
 آدِ مدھِ انّتِ نِرنّکارنّ 
آد ۔ آگاز۔ مدھ ۔ درمیان ۔ انت۔ آکر۔ نرکار۔ خدا جو وجود کے بغیر ہے ۔بلا جسم و حجم۔
جو عالم کے آغاز درمیانی عرصے میں اور پاکدامن ہے ۔ جو عالم کے آغاز درمیانی عرصے میں اور بوقت اخرت ہوگا ۔ 


ਆਪਹਿ ਸੁੰਨ ਆਪਹਿ ਸੁਖ ਆਸਨ 
aapeh sunn aapeh sukh aasan.
He Himself is there when there is nothingness and He Himself is in a state of peace.
ਪ੍ਰਭੂ ਖੁਦ ਇਕੱਲਰੂਪ (ਆਫੁਰ ਤਾੜੀਅੰਦਰ ਭੀ ਹੈ ਅਤੇ ਖੁਦ ਹੀ ਸ਼ਾਂਤ ਸਮਾਧ ਵਿੱਚ ਹੈ
 آپہِ سُنّن آپہِ سُکھ آسن 
سن ۔ سنسا۔ بغیر جاندا ر۔ حیوانات ۔ بغیر قائنات قدرت۔ سکھ آسن۔ جاسن۔ یش ۔ صفت ۔
ਆਪਹਿ ਸੁਨਤ ਆਪ ਹੀ ਜਾਸਨ 
aapeh sunat aap hee jaasan.
He Himself sings and He Himself listens to His own praises.
ਆਪਣਾ ਜੱਸ ਉਹ ਆਪ ਕਰਦਾ ਹੈਅਤੇ ਆਪ ਹੀ ਸ੍ਰਵਣ ਕਰਦਾ ਹੈ
 آپہِ سُنت آپ ہیِ جاسن 
سنت ۔ سنتا ہے ۔ صلاح۔
وہ خود ہی سنتا ہے اور خو دی اپنا آپ صفت صلاح ( ستائش ) کرتا ہے ۔ 


ਆਪਨ ਆਪੁ ਆਪਹਿ ਉਪਾਇਓ 
aapan aap aapeh upaa-i-o.
He Himself created Himself.
ਆਪਣਾ ਆਪ ਉਸ ਨੇ ਆਪੇ ਹੀ ਪੈਦਾ ਕੀਤਾ ਹੈ
 آپن آپُ آپہِ اُپائِئو 
اپائیو۔ پیدا کیا۔
اس نے آپنے آپ کو خو دہی پیدا کیا ہے ۔ 


ਆਪਹਿ ਬਾਪ ਆਪ ਹੀ ਮਾਇਓ 
aapeh baap aap hee maa-i-o.
He Himself is His father and Himself His mother.
ਉਹ ਆਪ ਆਪਣਾ ਪਿਤਾ ਹੈ ਅਤੇ ਆਪ ਹੀ ਆਪਣੀ ਮਾਤਾ
 آپہِ باپ آپ ہیِ مائِئو 
خود ہی ماں ہے اور خو دہی باپ بھی ہے ۔ 


ਆਪਹਿ ਸੂਖਮ ਆਪਹਿ ਅਸਥੂਲਾ 
aapeh sookham aapeh asthoolaa.
He Himself is intangible and He Himself is tangible.
ਅਣਦਿੱਸਦੇ ਤੇ ਦਿੱਸਦੇ ਸਰੂਪ ਵਾਲਾ ਆਪ ਹੀ ਹੈ
 آپہِ سوُکھم آپہِ استھوُلا 
سکوھم۔ قابل احساس۔ استھو لا ۔ ظاہر۔ قائنات عالم ۔
خود ہی ظاہر اور خود ہی اوجھل ہے ۔ 


ਲਖੀ  ਜਾਈ ਨਾਨਕ ਲੀਲਾ 
lakhee na jaa-ee naanak leelaa. ||1||
O Nanak, His wondrous play cannot be understood. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੀ ਇਹ ਜਗਰਚਨਾ ਵਾਲੀਖੇਡ ਬਿਆਨ ਨਹੀਂ ਕੀਤੀ ਜਾ ਸਕਦੀ 
 لکھیِ ن جائیِ نانک لیِلا 
لیلا۔ کھیل تماش۔ سارا عالم خدا کا خود کا کود پیدا کیا ہوا ہے اور خود پیدا کرنے کی توفیق رکھتا ہے ۔ اے نانک وہ سارے عالم مین خودہی بس رہا ہے ۔ اس کے علاوہ دوسری کوئی ہستی نہیں
اے نانک۔ یہ الہٰی کھیل بیان سے سےباہر ہے ۔ 


ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਪ੍ਰਭ ਦੀਨ ਦਇਆਲਾ 
kar kirpaa parabh deen da-i-aalaa.
O God, compassionate to the helpless, please bestow mercy on me,
ਹੇ ਦੀਨਾਂ ਉਤੇ ਦਇਆ ਕਰਨ ਵਾਲੇ ਪ੍ਰਭੂਮੇਰੇ ਉਤੇ ਮਿਹਰ ਕਰ, 
 کرِ کِرپا پ٘ربھ دیِن دئِیالا 
دین دیالا۔ غریبوں ۔ ناتوانوں پر رحم کرنے والے ۔
۔ اے خدا غریبوں کے لئے رحمان الرحیم ہے کرم و عنایت سے مہربانی کرتا 


ਤੇਰੇ ਸੰਤਨ ਕੀ ਮਨੁ ਹੋਇ ਰਵਾਲਾ  ਰਹਾਉ 
tayray santan kee man ho-ay ravaalaa. rahaa-o.
so that I may have respect in my heart for Your saints as if I am the dust of their feet. ||Pause||
ਤਾਂ ਜੋ ਮੇਰਾ ਦਿਲ ਤੇਰੇ ਸੰਤ ਜਨਾਂ ਦੇ ਚਰਨਾਂ ਦੀ ਧੂੜ ਬਣਿਆ ਰਹੇ l
 تیرے سنّتن کیِ منُ ہوءِ رۄالا  رہاءُ 
سنتں۔ پاکدامن خدا رسیدہ ۔ روالا۔ دہول۔ خاک ۔ رہاؤ۔ مرکزری نقطہ نگاہ ۔ مقصد۔ آصل۔ خیال کا مقصد۔
کہ تیرے پاکدامن خدا رسیدہ سنتوں کی من پاؤں کی دھول ہوجائے ۔ 


ਸਲੋਕੁ 
salok.
Salok:
 سلوکُ 
ਨਿਰੰਕਾਰ ਆਕਾਰ ਆਪਿ ਨਿਰਗੁਨ ਸਰਗੁਨ ਏਕ 
nirankaar aakaar aap nirgun sargun ayk.
He is formless and also in various forms of His creation, the One is intangible (without three modes of Maya) and also tangible (with attributes of Maya).
ਆਕਾਰਰਹਿਤ ਪਰਮਾਤਮਾ ਆਪ ਹੀ ਜਗਤ– ਆਕਾਰ ਬਣਾਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਆਪ ਹੀ ਨਿਰੰਕਾਰ ਰੂਪ ਵਿਚ ਮਾਇਆ ਦੇ ਤਿੰਨ ਸੁਭਾਵਾਂ ਤੋਂ ਪਰੇ  ਹੈਤੇ ਜਗਤਰਚਨਾ ਰਚ ਕੇ ਆਪ ਹੀ ਮਾਇਆ ਦੇ ਤਿੰਨ ਗੁਣਾਂ ਵਾਲਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
 نِرنّکار آکار آپِ نِرگُن سرگُن ایک 
آکار۔ شکل وصور ت۔ نرنکار۔ بغیر شکل وصورت۔
بلا حجم و وجود خودا خود ہی اپنا آکار پھیلاؤ کرتا ہے ۔ کود ہی عالم دنیاوی دولت کے اثرات کے بغیر اور خو دہی دنیاوی دولت کے زیر اثرات عالم بناتا ہے ۔


ਏਕਹਿ ਏਕ ਬਖਾਨਨੋ ਨਾਨਕ ਏਕ ਅਨੇਕ 
aykeh ayk bakhaanano naanak ayk anayk. ||1||
O Nanak, describe God as the one and only one, who is both singular and yet infinite. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਆਪਣੇ ਇਕ ਸਰੂਪ ਤੋਂ ਅਨੇਕਾਂ ਰੂਪ ਬਣਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈਜੋ ਉਸ ਤੋਂ ਵੱਖਰੇ ਨਹੀਂਇਹੀ ਕਿਹਾ ਜਾ ਸਕਦਾ ਹੈ ਕਿ ਉਹ ਇਕ ਆਪ ਹੀ ਆਪ ਹੈ 
 ایکہِ ایک بکھاننو نانک ایک انیک 
اے نانک۔ خدا واحد سے اپنے آپ کو بیشمار شکلوں میں تبدیل کر لیتا ہے غرض یہ کہ تمام اس سے جدانہیں ہیں۔ غرض یہ کہ وہ خود ہی ہے ۔ 


ਪਉੜੀ 
pa-orhee.
Pauree:
 پئُڑیِ 
پوڑی ۔
ਓਅੰ ਗੁਰਮੁਖਿ ਕੀਓ ਅਕਾਰਾ 
o-aN gurmukh kee-o akaaraa.
ONG: God, who is sacred and supreme, created the universe, .
ਵੱਡੇ ਗੁਰੂਇਕ ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਸਮੂਹ ਸਰੂਪ ਸਾਜੇ ਹਨ
 اوئنّ گُرمُکھِ کیِئو اکارا 
گورمکھ ۔ مرید مرشد۔
مریدان مرشد بنانے کے لئے یہ عالم پیدا کیا ہے ۔ 


ਏਕਹਿ ਸੂਤਿ ਪਰੋਵਨਹਾਰਾ 
aykeh soot parovanhaaraa.
He has strung the entire creation, all on the single thread of universal Law.
ਸਾਰੇ ਜੀਵਜੰਤਾਂ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਇਕੋ ਹੀ ਹੁਕਮਧਾਗੇ ਵਿਚ ਪਰੋਤਾ ਹੋਇਆ ਹੈ 
 ایکہِ سوُتِ پروۄنہارا 
سوت۔ نظام ۔ زیر فرمان۔
خد ا تمام جانداروں کو ایک ہی فرمان اور نظام میں رکھتے کی طاقتتوفیق رکھتا ہے ۔ 


ਭਿੰਨ ਭਿੰਨ ਤ੍ਰੈ ਗੁਣ ਬਿਸਥਾਰੰ 
bhinn bhinn tarai gun bisthaaraN.
God has diversified it in three main impulses of virtue, vice, and power.
ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਮਾਇਆ ਦੇ ਤਿੰਨ ਗੁਣਾਂ ਦਾ ਵੱਖ ਵੱਖ ਖਿਲਾਰਾ ਕਰ ਦਿੱਤਾ ਹੈ
 بھِنّن بھِنّن ت٘رےَ گُنھ بِستھارنّ 
تریگن۔ تین اوصاف۔ ( رجو ۔ ترقی اور حکومت کا خیال تمو طمع لالچ ۔ ستو۔ سچائی۔ وستھار۔ پھیلاؤ۔
خدا نے اپنے پوشیدہ شکل وصورت سے 


ਨਿਰਗੁਨ ਤੇ ਸਰਗੁਨ ਦ੍ਰਿਸਟਾਰੰ 
nirgun tay sargun daristaaraN.
From His intangible form, He created this visible universe.
ਪ੍ਰਭੂ ਨੇ ਆਪਣੇ ਅਦ੍ਰਿਸ਼ਟ ਰੂਪ ਤੋਂ ਦਿੱਸਦਾ ਜਗਤ ਰਚਿਆ ਹੈ
 نِرگُن تے سرگُن د٘رِسٹارنّ 
نرگن۔ جب دنیاوی دولت کے تینوں اوساف اوصاف کا اثر نہ ہو۔ سرگن۔ علام کی وہ شکل وصورت جس میں دنیاوی دولت اثر اندا ز ہو۔
یہ ظہور پذری عالم پیدا کیا ہے۔ 


ਸਗਲ ਭਾਤਿ ਕਰਿ ਕਰਹਿ ਉਪਾਇਓ 
sagal bhaat kar karahi upaa-i-o.
The Creator has created the creation of all types.
ਰਚਣਹਾਰ ਨੇ ਅਨੇਕਾਂ ਕਿਸਮਾਂ ਬਣਾ ਕੇ ਜਗਤਉਤਪੱਤੀ ਕੀਤੀ ਹੈ
 سگل بھاتِ کرِ کرہِ اُپائِئو 
اے خدا تو نے بیشمار اقسام کے عالم کو پیدا کیا ہے ۔ 


ਜਨਮ ਮਰਨ ਮਨ ਮੋਹੁ ਬਢਾਇਓ 
janam maran man moh badhaa-i-o.
He has infused worldly attachment in the minds of His creatures, which is the root cause of their cycles of birth and death.
ਜਨਮ ਮਰਨ ਦਾ ਮੂਲ ਸੰਸਾਰੀ ਮਮਤਾਜੀਵਾਂ ਦੇ ਮਨ ਅੰਦਰ ਭੀ ਤੂੰ ਹੀ ਵਧਾਇਆ ਹੈ,
 جنم مرن من موہُ بڈھائِئو 
اور زندگی اور موت کی تو نے ہی بڑھائیا اور پیدا کیا ہے ۔ 


ਦੁਹੂ ਭਾਤਿ ਤੇ ਆਪਿ ਨਿਰਾਰਾ 
duhoo bhaat tay aap niraaraa.
He Himself is free from birth and death.
ਪਰ ਉਹ ਆਪ ਜਨਮ ਮਰਨ ਤੋਂ ਵੱਖਰਾ ਹੈਂ
 دُہوُ بھاتِ تے آپِ نِرارا 
نرارا۔ نرالا۔ انوکھا۔
مگر خود دونوں سے آزاد اور علیحدہ ہے ۔ 


ਨਾਨਕ ਅੰਤੁ  ਪਾਰਾਵਾਰਾ 
naanak ant na paaraavaaraa. ||2||
O Nanak, God’s creation has no end or limitation. ||2||
ਹੇ ਨਾਨਕਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਉਰਲੇ ਪਰਲੇ ਬੰਨੇ ਦਾ ਅੰਤ ਨਹੀਂ ਪਾਇਆ ਜਾ ਸਕਦਾ l
 نانک انّتُ ن پاراۄارا 
پاراوار۔ جو ہر جگہ موجو دہے ۔
اے نانک۔ خدا کا انجام و آخرت اور شمار اور وسعت کا اندازہ نہیں ہو سکتا ہے (2) 


ਸਲੋਕੁ 
salok.
Shalok:
 سلوکُ 
ਸੇਈ ਸਾਹ ਭਗਵੰਤ ਸੇ ਸਚੁ ਸੰਪੈ ਹਰਿ ਰਾਸਿ 
say-ee saah bhagvant say sach sampai har raas.
They alone are spiritually rich who acquire the wealth of God’s Name.
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਪਾਸ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮਧਨ ਹੈਉਹੀ ਸਾਹੂਕਾਰ ਹਨਉਹੀ ਧਨ ਵਾਲੇ ਹਨ 
 سیئیِ ساہ بھگۄنّت سے سچُ سنّپےَ ہرِ راسِ 
سیئی ۔ وہی ۔ ساہ ۔ شاہ۔ دولتمند۔ بادشاہ۔ بھگونت ۔ خوش قیمت۔ سچ سنپے ۔ سچی دولت۔ سچا سرمایہ ۔ ہر راس۔ راس۔ پونجی ۔
وہی جن کے دامن میں الہٰی نام کا سرمایہ ہے خدا کے نام کا سچ ہے وہی شوہوکار سرمایہ دار ہیں۔ خوش قسمت ہین۔ 


ਨਾਨਕ ਸਚੁ ਸੁਚਿ ਪਾਈਐ ਤਿਹ ਸੰਤਨ ਕੈ ਪਾਸਿ 
naanak sach such paa-ee-ai tih santan kai paas. ||1||
O’ Nanak, it is from such saints that we receive the wealth of God’s Name and spiritual purity. ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਅਜਿਹੇ ਸੰਤ ਜਨਾਂ ਤੋਂ ਹੀ ਨਾਮਧਨ ਤੇ ਆਤਮਕ ਪਵਿੱਤ੍ਰਤਾ ਹਾਸਲ ਹੁੰਦੀ ਹੈ
 نانک سچُ سُچِ پائیِئےَ تِہ سنّتن کےَ پاسِ 
سچ ۔ خدا۔ سچ ۔ پاکیزتی ۔ تیہہ ۔ ان ۔
اے نانک ایسے انسانوں سے سچے نام کی سچی اور حقیقی دولت اور روحانی پاکیزگی حاصل ہوتی ہے (1) 


ਪਵੜੀ 
pavrhee.
Pauree:
 پۄڑیِ 
پوری ۔
پوڑی
ਸਸਾ ਸਤਿ ਸਤਿ ਸਤਿ ਸੋਊ 
sasaa sat sat sat so-oo.
Sassa (alphabet): God is True, eternal and everlasting.
ਉਹ ਪਰਮਾਤਮਾ ਸਦਾਥਿਰ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਹੈਸਦਾਥਿਰ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਹੈ, 
 سسا ستِ ستِ ستِ سوئوُ 
وؤ۔ وہی ۔ ست ۔ صدیوی ۔
(سا) خدا ہی صدیوی اور ہمیشہ رہنے والا ہے ۔ 


ਸਤਿ ਪੁਰਖ ਤੇ ਭਿੰਨ  ਕੋਊ 
sat purakh tay bhinn na ko-oo.
No one is separate from that true Being (eternal God).
ਉਸ ਸਦਾਥਿਰ ਵਿਆਪਕ ਪ੍ਰਭੂ ਤੋਂ ਵੱਖਰੀ ਹਸਤੀ ਵਾਲਾ ਹੋਰ ਕੋਈ ਨਹੀਂ ਹੈ 
 ستِ پُرکھ تے بھِنّن ن کوئوُ 
ست پرکھ ۔ سچے انسان سے ۔ بھن۔ علیحدہ ۔ کوؤ۔کوئی۔
خدا ہی صدیوی و احد ہستیہے ۔ 


ਸੋਊ ਸਰਨਿ ਪਰੈ ਜਿਹ ਪਾਯੰ 
so-oo saran parai jih paa-yaN.
Only that person seeks His refuge, whom He Himself blesses.
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਆਪਣੀ ਸਰਨੀ ਪਾਂਦਾ ਹੈਉਹੀ ਪੈਂਦਾ ਹੈ
 سوئوُ سرنِ پرےَ جِہ پازنّ 
سوؤ۔ وہی ۔ سرن۔ پناہ۔ پایا۔ پاتا ہے ۔
اس سے علیحدہ کوئی ہستی نہیں۔ الہٰی پناہ اسے ملتی ہے ۔ 


ਸਿਮਰਿ ਸਿਮਰਿ ਗੁਨ ਗਾਇ ਸੁਨਾਯੰ 
simar simar gun gaa-ay sunaa-yaN.
Such a person always meditates on God, he sings God’s praises and recites them to others as well.
ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰ ਕੇ ਉਸ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਸਾਲਾਹ ਕਰ ਕੇ ਹੋਰਨਾਂ ਨੂੰ ਭੀ ਸੁਣਾਂਦਾ ਹੈ 
 سِمرِ سِمرِ گُن گاءِ سُنازنّ 
جسے وہ خود لیتا ہے ۔ وہ جو خدا کی حمدوثناہ کرتا ہے اور دوسروں کو سناتا ہے ۔ 


ਸੰਸੈ ਭਰਮੁ ਨਹੀ ਕਛੁ ਬਿਆਪਤ 
sansai bharam nahee kachh bi-aapat.
No doubt or illusion afflicts this person,
ਕੋਈ ਸਹਮ ਕੋਈ ਭਟਕਣਾ ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਉਤੇ ਜ਼ੋਰ ਨਹੀਂ ਪਾ ਸਕਦਾ,
 سنّسےَ بھرمُ نہیِ کچھُ بِیاپت 
سنسے ۔ فکر۔ تشویش ۔ بھرم۔ وہم وگمان۔ پیاپت۔ پیدا ہوتا ہے ۔
اسے کوئی فکر تشوی نہیں رہتی 


ਪ੍ਰਗਟ ਪ੍ਰਤਾਪੁ ਤਾਹੂ ਕੋ ਜਾਪਤ 
pargat partaap taahoo ko jaapat.
because he visually beholds the obvious manifestion of God.
ਕਿਉਂਕਿ ਉਸ ਨੂੰ ਹਰ ਥਾਂ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਹੀ ਪ੍ਰਤਾਪ ਪ੍ਰਤੱਖ ਦਿੱਸਦਾ ਹੈ
 پ٘رگٹ پ٘رتاپُ تاہوُ کو جاپت 
پرگٹ۔ ظاہر۔ پرتاپ۔سہارا ۔ تاہو۔ اسے ۔ جاپت۔ معلوم ہوتا ہے ۔
کیونکہ اسے ہر جگہ الہٰی ظہور ہر جا نظر اتا ہے ۔ 


ਸੋ ਸਾਧੂ ਇਹ ਪਹੁਚਨਹਾਰਾ 
so saaDhoo ih pahuchanhaaraa.
The person who reaches this spiritual state is a true saint.
ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਇਸ ਆਤਮਕ ਅਵਸਥਾ ਤੇ ਪਹੁੰਚਦਾ ਹੈਉਸ ਨੂੰ ਸਾਧੂ ਜਾਣੋ
 سو سادھوُ اِہ پہُچنہارا 
پہنچنہارا۔ قابل رسائی (2)
جو انسان ایسی اخلاق اور اخلاقی حالت پالیتا ہے ۔ وہی حقیقی پاکدامن سادہو ہے ۔ 


ਨਾਨਕ ਤਾ ਕੈ ਸਦ ਬਲਿਹਾਰਾ 
naanak taa kai sad balihaaraa. ||3||
O’ Nanak, I am forever dedicated to him. ||3||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਆਖ)-ਮੈਂ ਉਸ ਤੋਂ ਸਦਾ ਸਦਕੇ ਹਾਂ 
 نانک تا کےَ سد بلِہارا 
اے نانک میں اس پر قربان ہوں۔ 


ਸਲੋਕੁ 
salok.
Shalok:
 سلوکُ 
سلوک:
ਧਨੁ ਧਨੁ ਕਹਾ ਪੁਕਾਰਤੇ ਮਾਇਆ ਮੋਹ ਸਭ ਕੂਰ 
Dhan Dhan kahaa pukaartay maa-i-aa moh sabh koor.
Why are you crying out for worldly wealth? All this emotional attachment to Maya is false.
ਕਿਉਂ ਹਰ ਵੇਲੇ ਧਨ ਇਕੱਠਾ ਕਰਨ ਲਈ ਹੀ ਕੂਕਦੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹੋਮਾਇਆ ਦਾ ਮੋਹ ਤਾਂ ਝੂਠਾ ਹੈ l
 دھنُ دھنُ کہا پُکارتے مائِیا موہ سبھ کوُر 
دھن ۔ دولت۔ سرمایہ۔ مائیا موہ ۔ دولت کی محبت کور۔ جھوٹی۔
کیون ہر وقت دولت کی ہی باتیں کرتے ہو۔ دولت یا سرمایہ کی محبت جھوٹی ہے