Urdu-page-5

ਨਾਨਕ ਆਖਣਿ ਸਭੁ ਕੋ ਆਖੈ ਇਕ ਦੂ ਇਕੁ ਸਿਆਣਾ ॥
نانکآکھنھِسبھُکوآکھےَاِکدوُاِکُسِیانھا
naanak aakhan sabh ko aakhai ik doo ik si-aanaa.
۔ ایک وداک ۔ ایک سے بڑھ کر ایک ۔
O’ Nanak, everyone speaks of Him, acting wiser than the rest.
نانک کہتے ہیں تو سب کہتے ہیں کہ سب سے بڑھ کر دانا نہیں

ਵਡਾ ਸਾਹਿਬੁ ਵਡੀ ਨਾਈ ਕੀਤਾ ਜਾ ਕਾ ਹੋਵੈ ॥
ۄڈاساہِبُۄڈیِنائیِکیِتاجاکاہوۄےَ
vadaa saahib vadee naa-ee keetaa jaa kaa hovai.
Great is the Master, Great is His Name. Everything happens according to His Will.
۔ اعلٰے ہے وُہ مالک شہرت اور نامور ہے وہ ۔قادر ہے وہ کرنیکا جو چاہتا ہے ہو جاتا ہے ۔

ਨਾਨਕ ਜੇ ਕੋ ਆਪੌ ਜਾਣੈ ਅਗੈ ਗਇਆ ਨ ਸੋਹੈ ॥੨੧॥
نانکجےکوآپوَجانھےَاگےَگئِیانسوہےَ
naanak jay ko aapou jaanai agai ga-i-aa na sohai. ||21||
O’ Nanak, one who claims to know the unknowable God fully,
is not going to be worthy of His grace. ||21||
نانکجو خودی سے بھرا ہے کب آگے عزت پاتا ہے۔

Stanza 22
اس پیرا گراف میں یہ بتایا گیا ہے کہ خدا کی تخلیق کی حدود انسانی معلومات کی ہر حد سے باہر ہیں۔ اسے کسی بھی لفظ سے بیان نہیں کیا جا سکتا۔ صرف خالق ہی جانتا ہے کہ اس کی تخلیق کتنی وسیع ہے( کیونکہ یہ مسلسل پیدا بھی ہو رہی ہے اور ختم بھی ہو رہی ہے)۔
This stanza states that God’s Creation is so vast that it is beyond all limits known to man. No words can describe it. Only the Creator knows how large His Creation is. (as it is continually being created and destroyed)

ਪਾਤਾਲਾ ਪਾਤਾਲ ਲਖ ਆਗਾਸਾ ਆਗਾਸ ॥
پاتالاپاتاللکھآگاساآگاس॥
paataalaa paataal lakh aagaasaa aagaas.
پاتال ۔ زیر زمین ۔آگاس ۔ آسمان
There are nether worlds beneath nether worlds, and hundreds of
thousands of heavenly worlds above.
لاکھوں ہیں زیر (زمین) ، زمینیں اور لاکھوں ہی آسمان بھی ہیں

ਓੜਕ ਓੜਕ ਭਾਲਿ ਥਕੇ ਵੇਦ ਕਹਨਿ ਇਕ ਵਾਤ ॥
اوڑکاوڑکبھالِتھکےۄیدکہنِاِکۄات
orhak orhak bhaal thakay vayd kahan ik vaat.
اوڑک۔ آخر ۔اک وات ایک بات۔
The vedas say that scholars have exhausted themselves
trying to find the limits of His creation.
ڈھونڈے ڈھونڈے ہوگئے ماند ویدوں نے بھی ایک ہی بات بتائی ہے۔

ਸਹਸ ਅਠਾਰਹ ਕਹਨਿ ਕਤੇਬਾ ਅਸੁਲੂ ਇਕੁ ਧਾਤੁ ॥
سہساٹھارہکہنِکتیبااسُلوُاِکُدھاتُ
sahas athaarah kahan kataybaa asuloo ik Dhaat.
سہس اٹھارہ ۔ اُٹھاراں ہزار ۔اصلو حقیقتن۔دھات ۔ ذات ۔
The scriptures say that there are 18,000 worlds. But in reality, they are
innumerous; There is only one origin of all of them, God Himself.
اٹھارہ ہزار کتابیں بیان کرتی ہیں۔ حقیقتاـــ واحدہے ذات خدا کی

ਲੇਖਾ ਹੋਇ ਤ ਲਿਖੀਐ ਲੇਖੈ ਹੋਇ ਵਿਣਾਸੁ ॥
لیکھاہوءِتلِکھیِئےَلیکھےَہوءِۄِنھاسُ
laykhaa ho-ay ta likee-ai laykhai ho-ay vinaas.
لیکھا ۔حساب۔لکھتے ہوئے وناس۔ بکھتے بکھتے مٹ جاتا ہے۔
Accounting for the infinite creation of God is just not possible.
(No numbers even exist that could be used to describe that)
اگر حساب ہو سبھی لکھا جائے ۔حساب کرتے کرتے حساب ہی ختم ہو جاتا ہے ۔ انسان ۔

ਨਾਨਕ ਵਡਾ ਆਖੀਐ ਆਪੇ ਜਾਣੈ ਆਪੁ ॥੨੨॥
نانکۄڈاآکھیِئےَآپےجانھےَآپُ
naanak vadaa aakhee-ai aapay jaanai aap. ||22||
O’ Nanak, God is great; He alone knows how great He is. ||22||
اے نا نک، اللہ بہت بڑا ہے؛ وہ کتنا بڑا ہے یہ صرف وہ خود ہی جانتا ہے

Stanza 23
اس پیراگراف کا خلاصہ یہ ہے کہ خدا کی تخلیق اس کے قریب ترین عقیدت مندوں اور مداحوں کی سمجھ سے بھی بالاتر ہے۔
The synopsis of this stanza is that God’s Creation is beyond the comprehension of even His closest devotees and admirers.

ਸਾਲਾਹੀ ਸਾਲਾਹਿ ਏਤੀ ਸੁਰਤਿ ਨ ਪਾਈਆ ॥
سالاہیِسالاہِایتیِسُرتِنپائیِیا
saalaahee saalaahi aytee surat na paa-ee-aa.
صلاحی ۔ توصیف ۔اپنی ۔ اتنی ۔سرت ہوش ۔، ندیاں ۔ دریا ۔واہ ۔نالے ۔سمند۔ سمند۔
Those who praise the admirable God, (unite with Him but) cannot
assess the magnitude of His splendor and glory.
کرتے ہیں توصیف خدا کی مگر اتنی ہے سمجھ کہاں

ਨਦੀਆ ਅਤੈ ਵਾਹ ਪਵਹਿ ਸਮੁੰਦਿ ਨ ਜਾਣੀਅਹਿ ॥
ندیِیااتےَۄاہپۄہِسمُنّدِنجانھیِئہِ
nadee-aa atai vaah pavahi samund na jaanee-ahi.
ندیاں ۔ دریا ۔واہ ۔نالے ۔سمند۔ سمند۔
That is like the streams and rivers which flow into the ocean
and unite with it but cannot realize its vastness.
ندیاں اور نالے پڑیں سمندر لیکن اُسکی (پایں) جانیں گہرائی کہا ں

ਸਮੁੰਦ ਸਾਹ ਸੁਲਤਾਨ ਗਿਰਹਾ ਸੇਤੀ ਮਾਲੁ ਧਨੁ ॥
سمُنّدساہسُلتانگِرہاسیتیِمالُدھنُ
samund saah sultaan girhaa saytee maal Dhan.
(Even) the kings and emperors with mountains of property and oceans of wealth
سمندرکاہو بادشاہ اور پہاڑوں جتنی دولت کا ہومالک

ਕੀੜੀ ਤੁਲਿ ਨ ਹੋਵਨੀ ਜੇ ਤਿਸੁ ਮਨਹੁ ਨ ਵੀਸਰਹਿ ॥੨੩॥
کیِڑیِتُلِنہوۄنیِجےتِسُمنہُنۄیِسرہِ
keerhee tul na hovnee jay tis manhu na veesrahi. ||23||
are no match to the poorest of the poor who do not ever forget God. ||23||
اُس چیونٹی کے ہیں برابر ۔کرتا ہو جو یاد خدا ۔

Stanza 24
یہاں یہ بتایاگیا ہے کہ خدا کی تخلیق کا کوئی اختتام نہیں ہے۔ یہ اتنا وسیع ہے کہ اس کی حدود کو جاننا یا ان کو بیان کرنا ممکن نہیں ہےمذید یہ کہ، اس کی ساری خوبیاں یا حتی کہ اس کے عزائم کو بھی جاننا ممکن نہیں ہے۔ وہ اکیلا اپنی بلند اور سربلند ریاست کو جانتا ہے۔
s stated here that there is no end to God’s creation. It is so vast that it is impossible to know or describe its boundaries. Also, it is not possible to know all His virtues or even His motives. He alone knows His Lofty and Exalted State.

ਅੰਤੁ ਨ ਸਿਫਤੀ ਕਹਣਿ ਨ ਅੰਤੁ ॥
انّتُنسِپھتیِکہنھِنانّتُ
ant na siftee kahan na ant.
صفت، وصف ، گُن ۔
Endless are God’s virtues; endless is their description.
بیشمار اوصاف کا مالک ہے خدا۔گنتی میں کب آئے ہیں

ਅੰਤੁ ਨ ਕਰਣੈ ਦੇਣਿ ਨ ਅੰਤੁ ॥
انّتُنکرنھےَدینھِنانّتُ
ant na karnai dayn na ant.
کرنےقدرت ۔کائنات ۔دین ۔ سخاوت
There is no end to His creation; there is no end to His gifts.
بیشمار سخاوت اُسکی کائنات قدرت کا شمار ہیں

ਅੰਤੁ ਨ ਵੇਖਣਿ ਸੁਣਣਿ ਨ ਅੰਤੁ ॥
انّتُنۄیکھنھِسُنھنھِنانّتُ
ant na vaykhan sunan na ant.
انت ۔ شمار ۔
There can be found no end to the sights of His creation and no end to the sounds of His nature even if one tried for the longest period possible.
بیشمار نظارے تیرے ۔ بیشمار سماعت تیری

ਅੰਤੁ ਨ ਜਾਪੈ ਕਿਆ ਮਨਿ ਮੰਤੁ ॥
انّتُنجاپےَکِیامنِمنّتُ
ant na jaapai ki-aa man mant.
آخر ۔من منت ۔ دلی ارادہ
It is impossible to know the limit of His designs.
دلیراز نہیں بیشمار تیر ے آخر سمجھے جاتے ہیں

ਅੰਤੁ ਨ ਜਾਪੈ ਕੀਤਾ ਆਕਾਰੁ ॥
انّتُنجاپےَکیِتاآکارُ
ant na jaapai keetaa aakaar.
آکار ۔ پھیلاؤ۔ بناوٹ۔
The limits of the created universe cannot be perceived.
تیرے عالم کا شمار نہیں ہے خلقت کا

ਅੰਤੁ ਨ ਜਾਪੈ ਪਾਰਾਵਾਰੁ ॥
انّتُنجاپےَپاراۄارُ
ant na jaapai paaraavaar.
پاراوار حد قد۔
It is impossible to know where His creation starts and where it ends.
شمار ہیں ۔ وسعت کا انداز نہیں ہے

ਅੰਤ ਕਾਰਣਿ ਕੇਤੇ ਬਿਲਲਾਹਿ ॥
انّتکارنھِکیتےبِللاہِ
ant kaaran kaytay billaahi.
انت۔ آخر ۔ شمار ۔ بلاہے۔ چیختے ہیں ۔جہد کماتے ہیں۔
Many struggle to know His limits,
خدا کا حساب شمار سمجھنے کی خاطر کتنے ہی جہد کماتے ہیں اور بلاتے ہیں

ਤਾ ਕੇ ਅੰਤ ਨ ਪਾਏ ਜਾਹਿ ॥
تاکےانّتنپاۓجاہِ
taa kay ant na paa-ay jaahi.
but His limits cannot be found.
مگر کسی نے خدا کا انداز و شمار نہ پایا ہے

ਏਹੁ ਅੰਤੁ ਨ ਜਾਣੈ ਕੋਇ ॥
ایہُانّتُنجانھےَکوءِ
ayhu ant na jaanai ko-ay.
No one can know these limits.
شُمار و انداز ہیں خدا کا سمجھا کوئی کسی نے نہ اسکو جانا ہے

ਬਹੁਤਾ ਕਹੀਐ ਬਹੁਤਾ ਹੋਇ ॥
بہُتاکہیِئےَبہُتاہوءِ
bahutaa kahee-ai bahutaa ho-ay.
The more you say about them, the more there still remains to be said.
۔ جتنا زیادہ کہیں گے اسکو اتنی زیادہ عظمت ہے

ਵਡਾ ਸਾਹਿਬੁ ਊਚਾ ਥਾਉ ॥
ۄڈاساہِبُاوُچاتھاءُ
vadaa saahib oochaa thaa-o.
Great is the Master, limitless is His Heavenly Home.
باعظمت یہ مالک اُونچا بلند ترین مقام اسکا

ਊਚੇ ਉਪਰਿ ਊਚਾ ਨਾਉ ॥
اوُچےاوُپرِاوُچاناءُ
oochay upar oochaa naa-o.
Highest of the High is His Name.
اس اونچے سے اونچا نامورہے نام اس کا

ਏਵਡੁ ਊਚਾ ਹੋਵੈ ਕੋਇ ॥
ایۄڈُاوُچاہوۄےَکوءِ
ayvad oochaa hovai ko-ay.
Only someone as great as Him,
اتنی اُونچی عظمت والا ہو اگر کوئی

ਤਿਸੁ ਊਚੇ ਕਉ ਜਾਣੈ ਸੋਇ ॥
تِسُاوُچےکءُجانھےَسوءِ
tis oochay ka-o jaanai so-ay.
can know His Lofty and Exalted State.
اس اونچے کو جانے سوئی

ਜੇਵਡੁ ਆਪਿ ਜਾਣੈ ਆਪਿ ਆਪਿ ॥
جیۄڈُآپِجانھےَآپِآپِ
jayvad aap jaanai aap aap.
جیوڈ ۔ جتنا بڑا۔ جانے ۔ جانتا ہے ۔ آپ ۔ خودہی ۔
O’ Nanak, by His Grace, He bestows His Blessings. ||24||
خود ہی جانتا ہے اپنی عظمت اپنی شان او ر بزرگی

Stanza 25
اس پیرا میں ، گرو نانک بیان کرتے ہیں کہ خدا ہمیں بہت زیادہ نعمتیں عطا کرتا ہے۔ یہاں تک کہ وہ ان لوگوں کو دیتا رہتا ہے جو اس کی طرف سے کچھ بھی وصول کرنے سے انکار کرتے ہیں یہاں تک کہ جب وہ اس کے وجود سے انکار کرتے ہیں۔ لاعلمی کی وجہ سے ، ہم اس کا شکر ادا کرنا بھی بھول جاتے ہیں جیسے ہم اس کی نعمتوں کو کھاتے ہیں۔ سب کچھ اس کی مرضی سے ہی ہوتا ہے۔
اس کو پیار اور عقیدت سے یاد رکھنے کی خواہش ہی ہمارے لئے سب سے بڑا خزانہ ہے اور یہ خزانہ بھی خدا کی طرف سے ایک نعمت کے طور پر تحفہ ہے۔
In this stanza, Guru Nanak states that God bestows upon us immeasurable amounts of gifts; He keeps giving even to those who deny receiving anything from Him and even when they deny His existence. Due to ignorance, we forget to thank Him even as we consume His bounties.Everything happens by His Will.
Desire to remember Him with love and devotion is the greatest treasure we can have, and this treasure is also gifted as a blessing from God.

ਬਹੁਤਾ ਕਰਮੁ ਲਿਖਿਆ ਨਾ ਜਾਇ ॥
بہُتاکرمُلِکھِیاناجاءِ
bahutaa karam likhi-aa naa jaa-ay.
کرم۔ بخشش ۔
His Blessings are so abundant that they cannot be accounted for.
اتنی زیادہ بخشش ہے اُسکی تحریر میں کب آتی ہے

ਵਡਾ ਦਾਤਾ ਤਿਲੁ ਨ ਤਮਾਇ ॥
ۄڈاداتاتِلُنتماءِ
vadaa daataa til na tamaa-ay.
تل ۔ ذرہ بھر ۔طمائے۔ لالچ۔
The Great Giver believes only in giving and has not an iota of avarice.
اعلّٰے ہے داتا وہ جو حرص و طمع سے خالی ہے

ਕੇਤੇ ਮੰਗਹਿ ਜੋਧ ਅਪਾਰ ॥
کیتےمنّگہِجودھاپار
kaytay mangahi joDh apaar.
کیتے ۔ کئی۔ منگیہہ ۔ مانگتے ہیں۔جودھ۔ بہادر ، جنگجو ء۔اَپّار۔ بیشمار۔
So many great heroic warriors beg from the Infinite God!
بیمشارجنگجو اور بہادر جو اُس سے مانگتے رہتے ہیں

ਕੇਤਿਆ ਗਣਤ ਨਹੀ ਵੀਚਾਰੁ ॥
کیتِیاگنھتنہیِۄیِچارُ॥
kayti-aa ganat nahee veechaar.
So many contemplate and dwell upon Him, that they cannot be counted.
اِتنے نہیں یہ مانگنے والے گنتی اُن کی ممکن ہے

ਕੇਤੇ ਖਪਿ ਤੁਟਹਿ ਵੇਕਾਰ ॥
کیتےکھپِتُٹہِۄیکار
kaytay khap tutahi vaykaar.
کھپ ۔ کوشش و کاوش ۔تیٹہہ ۔ ختم ہو جاتے ہیں ۔وکار۔ بیفائدہ۔ بدکار ۔
So many are consumed in vices and perish in anxiety.
کتنے ہیں بدکار عالم میں جو بدکاری میں ہی ہیں ختم ہو جاتے ہیں۔

ਕੇਤੇ ਲੈ ਲੈ ਮੁਕਰੁ ਪਾਹਿ ॥
کیتےلےَلےَمُکرُپاہِ
kaytay lai lai mukar paahi.
مکر ۔ مُنکر ۔
So many keep enjoying God’s gifts, but deny
receiving them (by never acknowledging Him).
کہتے ہی جو اُس سے لے کر مُنکر ہو جاتے ہیں

ਕੇਤੇ ਮੂਰਖ ਖਾਹੀ ਖਾਹਿ ॥
کیتےموُرکھکھاہیِکھاہِ
kaytay moorakh khaahee khaahi.
مورکہہ ۔ کھاہی کھا ہے ۔ کھاتے ہیں
So many ignorant keeps on consuming (But forget the Giver).
اَور پاتے رہتے ہیں کتنےہی ناشکرے ہیں۔ جو شکر ادا نہ کرتے ہیں ۔اَور ہر دم کھاتے رہتے ہیں۔

ਕੇਤਿਆ ਦੂਖ ਭੂਖ ਸਦ ਮਾਰ ॥
کیتِیادوُکھبھوُکھسدمار
kayti-aa dookh bhookh sad maar.
کیتے ۔ کئی۔
So many are destined to endure distress, deprivation and constant abuse.
بیشمار عذاب اَور بھوک سے ہمیشہ مَرتے رہتے ہیں

ਏਹਿ ਭਿ ਦਾਤਿ ਤੇਰੀ ਦਾਤਾਰ ॥
ایہِبھِداتِتیریِداتار
ayhi bhe daat tayree daataar.
These sufferings are also Your blessings, O’ Great Giver
(because they divert us back to you for your benevolence).
اَے خدا یہ بھی تیری دین ہی ہے تو ہی سب کچھ دینے والا ہے

ਬੰਦਿ ਖਲਾਸੀ ਭਾਣੈ ਹੋਇ ॥
بنّدِکھلاسیِبھانھےَہوءِ
band khalaasee bhaanai ho-ay.
بَند ۔ غلامی ، قید ۔بھانے ۔ رضا ۔ حکم
Freedom from ego and worldly attachments is achieved only by
accepting Your Will.
غلامی اور بندش اَے خدا تیری رضا سے ہے اَور آزادی بھی تیری رَضا سے ہے

ਹੋਰੁ ਆਖਿ ਨ ਸਕੈ ਕੋਇ ॥
ہورُآکھِنسکےَکوءِ
hor aakh na sakai ko-ay.
No one else has any say in it.
میں ہے یہ جرات جو کہے یہ میری مَرضی ہے۔

ਜੇ ਕੋ ਖਾਇਕੁ ਆਖਣਿ ਪਾਇ ॥
جےکوکھائِکُآکھنھِپاءِ
jay ko khaa-ik aakhan paa-ay.
کھائیک ۔ نادان ۔جاہل۔مورکہہ ۔آکھن کہنے کی کوشش کرے۔
If some ignorant person suggests some way other than accepting God’s will
to overcome attachment to Maya,
اگر کوئی جاہل اِسکے علاوہ کہنا چاہتا ہے یا کہنے کی کوشش کرتا ہے

ਓਹੁ ਜਾਣੈ ਜੇਤੀਆ ਮੁਹਿ ਖਾਇ ॥
اوہُجانھےَجیتیِیامُہِکھاءِ
oh jaanai jaytee-aa muhi khaa-ay.
جیتیا ۔ جتنیاں ۔مہہ مونیہ ۔کھائے ۔ کھائے گا۔
he shall face the effects of his folly.
۔ تب سمجھ اُسے آجاتی ہے ۔جب منہ پر چوٹیں کھاتا ہے اور عذاب میں پڑ جاتا ہے ۔

ਆਪੇ ਜਾਣੈ ਆਪੇ ਦੇਇ ॥
آپےجانھےَآپےدےءِ
aapay jaanai aapay day-ay.
وئے ۔ دیتا ہے۔
He Himself knows (our needs) and keeps fulfilling them.
کوئی کوئی یہ بات بھی کہتا ہے ۔ کہ خدا ہی جانتا ہے

ਆਖਹਿ ਸਿ ਭਿ ਕੇਈ ਕੇਇ ॥
آکھہِسِبھِکیئیِکےءِ
aakhahi se bhe kay-ee kay-ay.
آکھیہ کہتے ہیں ۔سے بھے یہ بات بھی ۔کیئی ۔کئی ۔
Few acknowledge this fact.
اور آپ ہی دیتا رہتا ہے

ਜਿਸ ਨੋ ਬਖਸੇ ਸਿਫਤਿ ਸਾਲਾਹ ॥
جِسنوبکھسےسِپھتِسالاہ
jis no bakhsay sifat saalaah.
O’ Nanak, one who is blessed with the treasure of praising God,
جسے بخشے خدا حمد و ثناہ

ਨਾਨਕ ਪਾਤਿਸਾਹੀ ਪਾਤਿਸਾਹੁ ॥੨੫॥
نانکپاتِساہیِپاتِساہُ
naanak paatisaahee paatisaahu. ||25||
is spiritually the richest person in the world. || ||25||
اے نانک وہ شاہانِ شاہ ہے

Stanza 26
اس پیرا میںگرو نانک بیان کرتے ہیں کہ اپنے آپ میں خدا کی قیمتی خوبیوں کو پروان چڑھانا ہمارے دنیا میں آنے کا مقصد ہے اور جو لوگ خدا کی خوبیوں کو حاصل کرنے میں کامیاب ہوجاتے ہیں ، وہ خود قیمتی ہوجاتے ہیں۔ خدا کی خوبیاں اور اس کی نعمتیں ان گنت اور انسانی فہم سے بالاتر ہیں۔
In this stanza, Guru Nanak states that cultivating God’s invaluable qualities in ourselves is the purpose of our coming to this world and those who succeed in acquiring these Godly qualities, themselves become priceless. God’s virtues and His blessings are countless and beyond human comprehension.

ਅਮੁਲ ਗੁਣ ਅਮੁਲ ਵਾਪਾਰ ॥
امُلگُنھامُلۄاپار
amul gun amul vaapaar.
امل ۔ بیش قیمت۔ گن ۔ وصف ۔واپار۔ بیوپار۔ سوداگری
Priceless are God’s Virtues; Priceless is the effort to acquire those virtues.
مول نہیں تیرے وصفوں کا

ਅਮੁਲ ਵਾਪਾਰੀਏ ਅਮੁਲ ਭੰਡਾਰ ॥
امُلۄاپاریِۓامُلبھنّڈار॥
amul vaapaaree-ay amul bhandaar.
داپار ہیئے ۔ بیؤپاری ، بھنڈار ۔ خزانہ ۔
Priceless are those who acquire His Virtues and priceless are His Treasures.
مول نہیں۔ اُن کاجو اِسکے سوداگر ہیں

ਅਮੁਲ ਆਵਹਿ ਅਮੁਲ ਲੈ ਜਾਹਿ ॥
امُلآۄہِامُللےَجاہِ॥
amul aavahi amul lai jaahi.
مُل آویہ۔ اغول آتے ہیں۔َمُل لے جاچکے ۔ انمول ہیں اِس کو خرید کر بیجانیوالے
Priceless are those who come into this world and depart after acquiring His Virtues.
بغیر مول بیوپاری ہیں اَور بے مول خزانہ ہے اُنمول ہیں وہ ۔لینے والے انمول ہی لیجاتے ہیں

ਅਮੁਲ ਭਾਇ ਅਮੁਲਾ ਸਮਾਹਿ ॥
امُلبھاءِامُلاسماہِ
amul bhaa-ay amulaa samaahi.
اَمولبھائے ۔ بیش قیمت ۔انمول جنکو ہے پیار اس سے ۔امل سماہے ، اَنمول ہیں وہ جو اس میں مل جاتے ہیں ۔
Priceless are those who are imbued in his love. Priceless
are those who are absorbed in Him.
انمول ہیں وہ جنکا پیار ہے اِس سے انمول ہیں وہ جو اس میں مل جاتے ہیں

ਅਮੁਲੁ ਧਰਮੁ ਅਮੁਲੁ ਦੀਬਾਣੁ ॥
امُلُدھرمُامُلُدیِبانھُ
amul Dharam amul deebaan.
دھرم۔ قانون ۔ قانون الہّٰی ۔ یا قدرت ۔دیبان عدالت ۔ دربار ۔ بارگا ہ ۔
Priceless is His Divine Law of Dharma, Priceless is His Divine Court of Justice.
بے مول قانون خدا یا تیرا بے مول دربار تیرا ہے۔

ਅਮੁਲੁ ਤੁਲੁ ਅਮੁਲੁ ਪਰਵਾਣੁ ॥
امُلُتُلُامُلُپرۄانھُ
amul tul amul parvaan.
پروان قبول ۔ امل جسکی قیمت کا اندازہ نہ ہوسکے۔ تل۔تکڑی پیمانہ ۔ سکیل
Priceless is His system of justice, priceless are
the laws of Divine Justice.
بے مول تول تیرا ہے ۔بے مول پیمانہ تیرا

ਅਮੁਲੁ ਬਖਸੀਸ ਅਮੁਲੁ ਨੀਸਾਣੁ ॥
امُلُبکھسیِسامُلُنیِسانھُ
amul bakhsees amul neesaan.
۔ مٹہ ۔ ۔نیان۔منزل ۔ نشانہ ۔ ٹارگیٹ ۔ ۔فرمان ۔ حکم بخیس ۔ عنایت
Priceless are His blessings and priceless are His bounties.
۔ بے مول تیری ہے رحمت بے مول ہے منزل تیری

ਅਮੁਲੁ ਕਰਮੁ ਅਮੁਲੁ ਫੁਰਮਾਣੁ ॥
امُلُکرمُامُلُپھُرمانھُ
amul karam amul furmaan.
۔کرم۔بخشش
Priceless is His Mercy; Priceless is His Royal Command.
بے مول عنایت تیری ہے بے مول فرمان تیرا

ਅਮੁਲੋ ਅਮੁਲੁ ਆਖਿਆ ਨ ਜਾਇ ॥
امُلوامُلُآکھِیانجاءِ
amulo amul aakhi-aa na jaa-ay.
اُمُلو رَمُلّ ۔ زیادہ سے زیادہ جو بیان اور تحریر سے باہر ہے
He is Priceless – Priceless beyond expression!
کتنا ہے انمول تو یا رب کہتے میں کب آتا ہے

ਆਖਿ ਆਖਿ ਰਹੇ ਲਿਵ ਲਾਇ ॥
آکھِآکھِرہےلِۄلاءِ
aakh aakh rahay liv laa-ay.
آکہہ آکہہ رہے ۔ کہتے کہتے ماند ہو گئے ۔لو لائے ۔دھیان لگا کر
Many, by reciting Naam, in deep meditation get
absorbed in Him but fail to describe Him fully.
تجھ کو کہتے کہتے تجھ میں دھیان رک جاتا ہے ۔

ਆਖਹਿ ਵੇਦ ਪਾਠ ਪੁਰਾਣ ॥
آکھہِۄیدپاٹھپُرانھ
aakhahi vayd paath puraan.
آکھیہ ۔ کہہ رہے ہیں۔ پاٹھ ۔ سبق ۔
The writings in the holy scriptures (Vedas and Puranas) describe Him.
توصیف ہے تیری دیدوں اَور پرانوں میں

ਆਖਹਿ ਪੜੇ ਕਰਹਿ ਵਖਿਆਣ ॥
آکھہِپڑےکرہِۄکھِیانھ
aakhahi parhay karahi vakhi-aan.
پڑھے۔ پڑھتے ہیں ۔۔کریہہ دکھیان ۔ تشریحات کرتے ہیں
The scholars speak of Him and give discourses about Him.
کہتے ہیں پڑھتے ہیں اور کہہ سُناتے ہیں

ਆਖਹਿ ਬਰਮੇ ਆਖਹਿ ਇੰਦ ॥
آکھہِبرمےآکھہِاِنّد
aakhahi barmay aakhahi ind.
۔ آکھیہ برہحے ۔ برہما کہتا ہے ۔
Countless Brahmas and Indras speak of God.
برہما اَور اندر بھی تیری ستائیش کرتے ہیں