Urdu-Raw-Page-605

ਆਪੇਹੀਸੂਤਧਾਰੁਹੈਪਿਆਰਾਸੂਤੁਖਿੰਚੇਢਹਿਢੇਰੀਹੋਇ॥੧॥
aapay hee soot-Dhaar hai pi-aaraa sootkhinchay dheh dhayree ho-ay. ||1||
God Himself holds that thread of His power, and when He pulls the thread, the entire universe falls like a heap and is destroyed. ||1||
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਧਾਗੇਨੂੰਆਪਣੇਹੱਥਵਿਚਫੜਰੱਖਣਵਾਲਾਹੈ।ਜਦੋਂਉਹਧਾਗੇਨੂੰਖਿੱਚਲੈਂਦਾਹੈ, ਤਦੋਂਜਗਤਢਹਿਕੇਢੇਰੀਹੋਜਾਂਦਾਹੈ॥੧
آپے ہیِ سوُتدھارُ ہےَ پِیارا سوُتُ کھِنّچے ڈھہِ ڈھیریِ ہوءِ ॥੧॥
۔ سوت دھار۔ اس مالا کو رکھنے والا۔ سوت کھنچے ڈھیہہ ۔ ڈھیری ہوئے جب اس مالا سے دھاگا یا ضبط ختم کر دیتا تو مالا ڈھیر بن جاتی ہے مراد قیامت برپا ہوجاتی ہے
جب چاہتا ان منکوں کی مال اسے وہ دھاگا یعنی قوت نظم و نسق تو وہ منکے ڈھیر ہوجاتے ہیں مراد قیامات برپا ہوجاتی ہے (1)
ਮੇਰੇਮਨਮੈਹਰਿਬਿਨੁਅਵਰੁਨਕੋਇ॥
mayray man mai har bin avar na ko-ay.
O’ my mind, there is none other than God for me.
ਹੇਮੇਰੇਮਨ! ਮੈਨੂੰਪਰਮਾਤਮਾਤੋਂਬਿਨਾ (ਕਿਤੇਭੀ) ਕੋਈਹੋਰਨਹੀਂਦਿੱਸਦਾ।
میرے من مےَ ہرِ بِنُ اۄرُ ن کوءِ ॥
اے میرے دل مجھے خدا کے برابر دوسرا اس کا ثانی نظر نہیں آتا ۔
ਸਤਿਗੁਰਵਿਚਿਨਾਮੁਨਿਧਾਨੁਹੈਪਿਆਰਾਕਰਿਦਇਆਅੰਮ੍ਰਿਤੁਮੁਖਿਚੋਇ॥ਰਹਾਉ॥
satgur vich naam niDhaan hai pi-aaraa kar da-i-aa amrit mukh cho-ay. rahaa-o.
The treasure of Naam lies with the Guru; bestowing mercy, the Guru trickles the ambrosial nectar in his disciple’s mouths. ||Pause||
ਨਾਮ-ਖ਼ਜ਼ਾਨਾਗੁਰੂਵਿਚਮੌਜੂਦਹੈ।ਗੁਰੂਮੇਹਰਕਰਕੇਆਤਮਕਜੀਵਨਦੇਣਵਾਲਾਨਾਮ-ਜਲਸਿੱਖਦੇਮੂੰਹਵਿਚਚੋਂਦਾਹੈ॥ਰਹਾਉ॥
ستِگُر ۄِچِ نامُ نِدھانُ ہےَ پِیارا کرِ دئِیا انّم٘رِتُ مُکھِ چوءِ ॥ رہاءُ ॥
اور ۔ دوسرا۔ نام ۔ ندھان۔ سچ و حقیقت کا خزانہ
سچے مرشد کے پاس الہٰی نام سچ و حقیقت کا خزانہ ہے ۔ مرشد اپنی کرم وعنایت و رحمت سے وہ آب حیات جس سے انسانی زندگی روحانی واخلاقی زندگی بن جاتی ہ انسان کے منہ میں ڈالتا ہے ۔ رہاؤ۔
ਆਪੇਜਲਥਲਿਸਭਤੁਹੈਪਿਆਰਾਪ੍ਰਭੁਆਪੇਕਰੇਸੁਹੋਇ॥
aapay jal thal sabhat hai pi-aaraa parabh aapay karay so ho-ay.
God Himself is present in all the oceans, lands and everywhere; whatever God does, comes to pass.

ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਪਾਣੀਵਿਚਧਰਤੀਵਿਚਹਰਥਾਂਮੌਜੂਦਹੈ।ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਜੋਕੁਝਕਰਦਾਹੈਉਹਜਗਤਵਿਚਵਾਪਰਦਾਹੈ।
آپے جل تھلِ سبھتُ ہےَ پِیارا پ٘ربھُ آپے کرے سُ ہوءِ ॥
۔ جل تھل ۔ زمین اور پانی ۔ سبھت ۔ سب جگہ ۔
خود خدا زمین سمندر غرض یہ کہ ہر جگہ موجود ہے جو وہ کرتا ہے سو ہوتا ہے
ਸਭਨਾਰਿਜਕੁਸਮਾਹਦਾਪਿਆਰਾਦੂਜਾਅਵਰੁਨਕੋਇ॥
sabhnaa rijak samaahadaa pi-aaraa doojaa avar na ko-ay.
The beloved God provides sustenance to all and there is none other than Him.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਸਭਜੀਵਾਂਨੂੰਰਿਜ਼ਕਅਪੜਾਂਦਾਹੈ (ਰਿਜ਼ਕਅਪੜਾਣਵਾਲਾ) ਉਸਤੋਂਬਿਨਾਕੋਈਹੋਰਨਹੀਂਹੈ।
سبھنا رِجکُ سماہدا پِیارا دوُجا اۄرُ ن کوءِ ॥
سبھت ۔ سب جگہ ۔ رزق ۔ روزی
سب کو روزی پہنچاتا ہے نہیں اس کے علاوہ کوئی دوسرا

ਆਪੇਖੇਲਖੇਲਾਇਦਾਪਿਆਰਾਆਪੇਕਰੇਸੁਹੋਇ॥੨॥
aapay khayl khaylaa-idaa pi-aaraa aapay karay so ho-ay. ||2||
The dear God Himself makes all to play the worldly play; whatever He Himself does, comes to pass. ||2||
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਜਗਤਦੇਸਾਰੇ) ਖੇਡਖਿਡਾਰਿਹਾਹੈ, ਉਹਆਪਹੀਜੋਕੁਝਕਰਦਾਹੈਉਹੀਹੁੰਦਾਹੈ॥੨॥
آپے کھیل کھیلائِدا پِیارا آپے کرے سُ ہوءِ ॥੨॥
خود ہی کھیل کھلاتاہے جو کرتا ہے سو ہوتا ہے (2)

ਆਪੇਹੀਆਪਿਨਿਰਮਲਾਪਿਆਰਾਆਪੇਨਿਰਮਲਸੋਇ॥
aapay hee aap nirmalaa pi-aaraa aapay nirmal so-ay. The dear God Himself is the most immaculate, and has immaculate reputation.
ਪ੍ਰੀਤਮਪ੍ਰਭੂਖੁਦ-ਬ-ਖੁਦਹੀਪ੍ਰੀਤਮਪਵਿੱਤ੍ਰਹੈਅਤੇਪਵਿੱਤ੍ਰਹੈਉਸਦੀਸ਼ੁਹਰਤ।

آپے ہیِ آپِ نِرملا پِیارا آپے نِرمل سوءِ ॥
نرملا۔ پاک۔ سوئے ۔
وہ خود پاک ہے اس لئے اس کی شہرت بھی پاک ہے

ਆਪੇਕੀਮਤਿਪਾਇਦਾਪਿਆਰਾਆਪੇਕਰੇਸੁਹੋਇ॥
aapay keemat paa-idaa pi-aaraa aapay karay so ho-ay.
The beloved God Himself evaluates all; whatever He does comes to pass.
ਆਪਹੀਪ੍ਰੀਤਮਸਾਰਿਆਂਦਾਮੁੱਲਪਾਉਂਦਾਹੈਅਤੇਆਪਹੀਜੋਕਰਦਾਹੈ, ਕੇਵਲਓਹੀਹੁੰਦਾਹੈ।
آپے کیِمتِ پائِدا پِیارا آپے کرے سُ ہوءِ ॥
سوئے ۔ آپ اسے سمجھاتا ہے
اپنی قدرقیمت خود ہی پاسکتا ہے جو کرتا ہے وہ ہوتا ہے

ਆਪੇਅਲਖੁਨਲਖੀਐਪਿਆਰਾਆਪਿਲਖਾਵੈਸੋਇ॥੩॥
aapay alakh na lakhee-ai pi-aaraa aap lakhaavai so-ay. ||3||
God is indescribable, His form cannot be described; He Himself causes some to understand His form. ||3||
ਪ੍ਰਭੂਦਾਸਰੂਪਬਿਆਨਨਹੀਂਕੀਤਾਜਾਸਕਦਾ, ਉਹਅਦ੍ਰਿਸ਼ਟਹੈ।ਆਪਣੇਸਰੂਪਦੀਸਮਝਉਹਆਪਹੀਦੇਣਵਾਲਾਹੈ॥੩॥
آپے الکھُ ن لکھیِئےَ پِیارا آپِ لکھاۄےَ سوءِ ॥੩॥
الکھ ۔ سوچ سمجھ سے بعید ۔ لکھئے ۔ سمجھنا۔ آپ لکھاوے ۔ سوئے ۔ آپ اسے سمجھاتا ہے
خدا انسانی سوچ وسمجھ سے باہر ہے ۔ آنکھوں سے اوجھل اور خود ہی سمجھاتا ہے (3)

ਆਪੇਗਹਿਰਗੰਭੀਰੁਹੈਪਿਆਰਾਤਿਸੁਜੇਵਡੁਅਵਰੁਨਕੋਇ॥
aapay gahir gambheer hai pi-aaraa tis jayvad avar na ko-ay.
God Himself is profound and unfathomable; there is none other as great as He.
ਪ੍ਰਭੂਖੁਦਡੂੰਘਾਅਤੇਅਥਾਹਹੈ।ਉਸਦੇਬਰਾਬਰਦਾਹੋਰਕੋਈਨਹੀਂਹੈ।
آپے گہِر گنّبھیِرُ ہےَ پِیارا تِسُ جیۄڈُ اۄرُ ن کوءِ ॥
گہر گہر ۔ نہایت ۔گنھبیر ۔ سنجیدہ
خدا نہایت سنجیدہ ہے مستقل مزاج ہے نہیں کوئی ثانی برابر اس کے ۔

ਸਭਿਘਟਆਪੇਭੋਗਵੈਪਿਆਰਾਵਿਚਿਨਾਰੀਪੁਰਖਸਭੁਸੋਇ॥
sabhghat aapay bhogvai pi-aaraa vich naaree purakh sabh so-ay.
Being present in all, God Himself enjoys everything; He is dwelling within every woman and man.
ਸਾਰੇਜੀਵਾਂਵਿਚਵਿਆਪਕਹੋਕੇਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਸਾਰੇਭੋਗਭੋਗਦਾਹੈ, ਹਰੇਕਇਸਤ੍ਰੀਪੁਰਖਵਿਚਉਹਆਪਹੈ।

سبھِ گھٹ آپے بھوگۄےَ پِیارا ۄِچِ ناریِ پُرکھ سبھُ سوءِ ॥
سب گھٹ ۔ ہر دل میں ۔ سوئے ۔وہی
ہر دل میں بستا ہے ہر مرد و زن میں نور اسی کا ہے

ਨਾਨਕਗੁਪਤੁਵਰਤਦਾਪਿਆਰਾਗੁਰਮੁਖਿਪਰਗਟੁਹੋਇ॥੪॥੨॥
naanak gupat varatdaa pi-aaraa gurmukh pargat ho-ay. ||4||2||
O’ Nanak, beloved God is pervading everywhere in an invisible form; He becomes manifest through the Guru’s teachings. ||4||2||
ਹੇਨਾਨਕ! ਪ੍ਰਭੂਸਾਰੇਜਗਤਵਿਚਲੁਕਿਆਹੋਇਆਮੌਜੂਦਹੈ।ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪਿਆਂਉਹਪ੍ਰਤੱਖਹੁੰਦਾਹੈ॥੪॥੨॥
نانک گُپتُ ۄرتدا پِیارا گُرمُکھِ پرگٹُ ہوءِ ॥੪॥੨॥
گپت ۔ پوشیدہ۔ گورمکھ ۔ مرشد کے وسیلے سے ۔ پرگٹ۔ ظاہر۔
اے نانک سب میں ہے پوشیدہ ظاہر مرید مرشد کرتا ہے ۔
ਸੋਰਠਿਮਹਲਾ੪॥
sorath mehlaa 4.
Raag Sorath, Fourth Guru:
سورٹھِ مہلا ੪॥

ਆਪੇਹੀਸਭੁਆਪਿਹੈਪਿਆਰਾਆਪੇਥਾਪਿਉਥਾਪੈ॥
aapay hee sabh aap hai pi-aaraa aapay thaap uthaapai.
Dear God Himself is all-in-all; He Himself creates and destroys everything.
ਹਰਥਾਂਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਆਪਹੈ, ਆਪਹੀ (ਜਗਤਨੂੰ) ਪੈਦਾਕਰਕੇਆਪਹੀਨਾਸਕਰਦੇਂਦਾਹੈ।
آپے ہیِ سبھُ آپِ ہےَ پِیارا آپے تھاپِ اُتھاپےَ ॥
تھاپ ۔ پید ا کرکے ۔ اتھاپے ۔ مٹاتا ہے
ہر جگہ خود بستا ہے خدا خود ہی کرکے عالم پیدا مٹا دیتا ہے
ਆਪੇਵੇਖਿਵਿਗਸਦਾਪਿਆਰਾਕਰਿਚੋਜਵੇਖੈਪ੍ਰਭੁਆਪੈ॥
aapay vaykh vigsadaa pi-aaraa kar choj vaykhai parabh aapai.God Himself rejoices beholding His creation; God Himself works wonders, and beholds them.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਜਗਤ-ਰਚਨਾਨੂੰ) ਵੇਖਕੇਖ਼ੁਸ਼ਹੁੰਦਾਹੈ, ਕੌਤਕ-ਤਮਾਸ਼ੇਰਚਕੇਆਪਹੀਵੇਖਦਾਹੈ, ਆਪਣੇਆਪਨੂੰਹੀਵੇਖਦਾਹੈ।
آپے ۄیکھِ ۄِگسدا پِیارا کرِ چوج ۄیکھےَ پ٘ربھُ آپےَ ॥
دیکھ وگسد۔ دیکھکر ۔ خوش ہوتا ہے ۔ چوج ۔ تماشے
خود ہی دیکھ کائنات قدرت اپنی خوش ہوتا ہےا ور خود ہی تماشے کرتا ہے
ਆਪੇਵਣਿਤਿਣਿਸਭਤੁਹੈਪਿਆਰਾਆਪੇਗੁਰਮੁਖਿਜਾਪੈ॥੧॥
aapay vantin sabhat hai pi-aaraa aapay gurmukh jaapai. ||1||
God Himself pervades all the woods and vegetation and is realized by following the Guru’s teachings. ||1||
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਹਰੇਕਵਣਵਿਚਹਰੇਕਤੀਲੇਵਿਚਹਰਥਾਂਮੌਜੂਦਹੈ।ਗੁਰੂਦੀਸ਼ਰਨਪਿਆਂਉਹਪ੍ਰਭੂਦਿੱਸਪੈਦਾਹੈ॥੧॥
آپے ۄنھِ تِنھِ سبھتُ ہےَ پِیارا آپے گُرمُکھِ جاپےَ ॥੧॥
د ن تن سبھت۔ جنگل اور گھاس کے تنکوں ۔ گورمکھ جاپے ۔ مرشد کے ذریعے سمجھ آتی ہے
خودہ ہے دیکھتا جنگل میں اور گھاس کے تنکے میں سب میں بستا ہے مرشد کے ذریعےسمجھا جاتا ہے ۔ غرض یہ کہ دیدار بھی ہوجاتا ہے (1)
ਜਪਿਮਨਹਰਿਹਰਿਨਾਮਰਸਿਧ੍ਰਾਪੈ॥
jap man har har naam ras Dharaapai.
O’ my mind, always meditate on God’s Name, through the sublime essence of Naam and you shall be satiated.
ਹੇਮੇਰੇਮਨ!ਤੂੰਸੁਆਮੀਮਾਲਕਦਾਸਿਮਰਨਕਰ।ਨਾਮ-ਅੰਮ੍ਰਿਤਨਾਲਤੂੰਰੱਜਜਾਵੇਗਾ।
جپِ من ہرِ ہرِ نام رسِ دھ٘راپےَ ॥
الہٰی نام سچ و حقیقت سے تسلی ہوتی ہے تسکین ملتا ہے
ਅੰਮ੍ਰਿਤਨਾਮੁਮਹਾਰਸੁਮੀਠਾਗੁਰਸਬਦੀਚਖਿਜਾਪੈ॥ਰਹਾਉ॥
amrit naam mahaa ras meethaa gur sabdee chakh jaapai. rahaa-o.
The ambrosial nectar of Naam is very sweet, but it’s real taste is realized only by tasting it through the Guru’s word. ||Pause||
ਆਤਮਕਜੀਵਨਦੇਣਵਾਲਾਨਾਮ-ਜਲ,ਬਹੁਤਮਿੱਠਾਹੈ।ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਰਾਹੀਂਚੱਖਕੇਹੀਪਤਾਲੱਗਦਾਹੈ॥ਰਹਾਉ॥
انّم٘رِت نامُ مہا رسُ میِٹھا گُر سبدیِ چکھِ جاپےَ ॥ رہاءُ ॥
انّم٘رِت نام ۔ آب حیات نام جس سے زندگی روحانی واخلایق بنتی ہے ۔ مہاں رس۔ بھاری لطف والا۔ گر سبدی ۔کالم یا سبق مرشد۔ چھک جاپے ۔لطف حاصل کرنے سے سمجھ آتی ہے
نام کا سحر انگیز امرت بہت میٹھا ہے ، لیکن اس کا اصلی ذائقہ صرف گرو کے کلام کے ذریعے چکھنے سے محسوس ہوتا ہے

ਆਪੇਤੀਰਥੁਤੁਲਹੜਾਪਿਆਰਾਆਪਿਤਰੈਪ੍ਰਭੁਆਪੈ॥
aapay tirath tulharhaa pi-aaraa aap tarai parabh aapai.
God Himself is the sacred river, Himself is the barge and He Himself goes across.ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਦਰਿਆਦਾਕੰਢਾਹੈ, ਆਪਹੀਤੁਲਹਾਹੈ, ਆਪਹੀ (ਦਰਿਆਤੋਂ) ਪਾਰਲੰਘਦਾਹੈ, ਆਪਣੇਆਪਨੂੰਹੀਲੰਘਾਂਦਾਹੈ।
آپے تیِرتھُ تُلہڑا پِیارا آپِ ترےَ پ٘ربھُ آپےَ ॥
ثلہڑا۔ عارضی کشتی
خود ہی ہے دریا کنارا خو دہی عارضی کشتی ہے خو دہی عبور وہ کرتا
ਆਪੇਜਾਲੁਵਤਾਇਦਾਪਿਆਰਾਸਭੁਜਗੁਮਛੁਲੀਹਰਿਆਪੈ॥
aapay jaal vataa-idaa pi-aaraa sabh jag machhulee har aapai.
God Himself casts the net of worldly attachments in the worldly ocean, and He Himself is all the fish (human beings) getting caught in the net.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਮਾਇਆਦਾ) ਜਾਲਵਿਛਾਂਦਾਹੈ (ਉਹਜਾਲਵਿਚਫਸਣਵਾਲਾ) ਸਾਰਾਜਗਤ-ਮਛਲੀਆਪਣੇਆਪਨੂੰਹੀਬਣਾਂਦਾਹੈ।
آپے جالُ ۄتائِدا پِیارا سبھُ جگُ مچھُلیِ ہرِ آپےَ ॥
۔ جال وتائید ۔ جال ۔ پھینکتا ہے ۔ پھیلاتا ہے پانی میں
خود ہی جال پھیلاتاہے سارا عالم اور خو دہی مچھلی ہوجاتا ہے
ਆਪਿਅਭੁਲੁਨਭੁਲਈਪਿਆਰਾਅਵਰੁਨਦੂਜਾਜਾਪੈ॥੨॥
aap abhul na bhul-ee pi-aaraa avar na doojaa jaapai. ||2||
God Himself is infallible, makes no mistakes, and none other seems like Him. |2||
ਪ੍ਰਭੂਆਪਭੁੱਲਣਵਾਲਾਨਹੀਂਹੈ, ਉਹਕਦੇਭੁੱਲਨਹੀਂਕਰਦਾ।ਉਸਦੇਬਰਾਬਰਦਾਹੋਰਕੋਈਨਹੀਂਦਿੱਸਦਾ॥੨॥
آپِ ابھُلُ ن بھُلئیِ پِیارا اۄرُ ن دوُجا جاپےَ ॥੨॥
ابھل۔ نہ بھولنے والا
اور خود ہی بناتا ہے تاہم نہیں بھولنے والا نہ وہ بھول ہی کرتا ہے نہیں اسکے برابر کوئی نہ کوئی اسکا ثانی ہے (2)
ਆਪੇਸਿੰਙੀਨਾਦੁਹੈਪਿਆਰਾਧੁਨਿਆਪਿਵਜਾਏਆਪੈ॥
aapay sinyee naad hai pi-aaraa Dhun aap vajaa-ay aapai. God Himself is the Yogi’s horn, He Himself plays the horn and Himself the tune coming out of that horn.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਵਜਾਣਵਾਲੀ) ਸਿੰਙੀਹੈ, ਆਪਹੀ (ਸਿੰਙੀਦੀ) ਆਵਾਜ਼ਹੈ, ਆਪਹੀ (ਸਿੰਙੀਦੀ) ਸੁਰਵਜਾਂਦਾਹੈ, ਆਪਣੇਆਪਨੂੰਹੀਵਜਾਂਦਾਹੈ।
آپے سِنّگنْیِ نادُ ہےَ پِیارا دھُنِ آپِ ۄجاۓ آپےَ ॥
سنگھی ۔ جوگیوں کا ساز ۔ یاناد بھی وہی ساز دھن۔ ۔ سر جو ساز سے نکلنے والی آواز
خو دہی ہے جوگی کی سنگی خو دہی اس کی آواز وہ ہے
ਆਪੇਜੋਗੀਪੁਰਖੁਹੈਪਿਆਰਾਆਪੇਹੀਤਪੁਤਾਪੈ॥
aapay jogee purakh hai pi-aaraa aapay hee tap taapai.
The beloved God Himself is the all-pervading Yogi and He Himself practices intense meditation.
ਉਹਸਰਬ-ਵਿਆਪਕਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਜੋਗੀਹੈ, ਆਪਹੀ (ਧੂਣੀਆਂਆਦਿਕਨਾਲ) ਤਪਤਪਦਾਹੈ।
آپے جوگیِ پُرکھُ ہےَ پِیارا آپے ہیِ تپُ تاپےَ ॥
خو دہی سرنکالتاہے خو دہی جوگی ہوکر تسپیا کرتا ہے
ਆਪੇਸਤਿਗੁਰੁਆਪਿਹੈਚੇਲਾਉਪਦੇਸੁਕਰੈਪ੍ਰਭੁਆਪੈ॥੩॥
aapay satgur aap hai chaylaa updays karai parabh aapai. ||3||
God Himself is the true Guru, Himself is the disciple and God Himself imparts the teachings. ||3||
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਗੁਰੂਹੈ, ਆਪਹੀਸਿੱਖਹੈ, ਆਪਹੀਆਪਣੇਆਪਨੂੰਉਪਦੇਸ਼ਕਰਦਾਹੈ॥੩॥
آپے ستِگُرُ آپِ ہےَ چیلا اُپدیسُ کرےَ پ٘ربھُ آپےَ ॥੩॥
خو دہی سچا مرشدہوکر خود ہی مرید ہوجاتا ہے اور خودہی واعظ سناتا ہے (3)
ਆਪੇਨਾਉਜਪਾਇਦਾਪਿਆਰਾਆਪੇਹੀਜਪੁਜਾਪੈ॥
aapay naa-o japaa-idaa pi-aaraa aapay hee jap jaapai.
God Himself inspire people to meditate on Naam; by pervading all human beings, He meditates on Himself.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਜੀਵਾਂਪਾਸੋਂਆਪਣਾਨਾਮਜਪਾਂਦਾਹੈ (ਜੀਵਾਂਵਿਚਵਿਆਪਕਹੋਕੇ) ਆਪਹੀਆਪਣਾਨਾਮਜਪਦਾਹੈ।
آپے ناءُ جپائِدا پِیارا آپے ہیِ جپُ جاپےَ
خود ہی نام اپنے سچ و حقیقت کی ریاض کراتا ہے خو ہی ریاض وہ کرتا ہے

ਆਪੇਅੰਮ੍ਰਿਤੁਆਪਿਹੈਪਿਆਰਾਆਪੇਹੀਰਸੁਆਪੈ॥
aapay amrit aap hai pi-aaraa aapay hee ras aapai.
God Himself is the ambrosial nectar and He Himself drinks that elixir of Naam.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਆਤਮਕਜੀਵਨਦੇਣਵਾਲਾਨਾਮ-ਜਲਹੈ, ਆਪਹੀਉਸਨਾਮ-ਰਸਨੂੰਪੀਂਦਾਹੈ, ਆਪਣੇਆਪਨੂੰਪੀਂਦਾਹੈ।
آپے انّم٘رِتُ آپِ ہےَ پِیارا آپے ہیِ رسُ آپےَ ॥
خو دہی روحانی زندگی بنانے والا آب حیات ہے وہ اور خود ہی لطف اٹھاتا ہے مراد خود کو خود ہی پیتا ہے

ਆਪੇਆਪਿਸਲਾਹਦਾਪਿਆਰਾਜਨਨਾਨਕਹਰਿਰਸਿਧ੍ਰਾਪੈ॥੪॥੩॥
aapay aap salaahadaa pi-aaraa jan naanak har ras Dharaapai. ||4||3||
O’ Nanak, by pervading all human beings God Himself sings His praises, and Himself gets satiated by the relish of Naam. ||4||3||
ਹੇਦਾਸਨਾਨਕ! ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਆਪਣੀਸਿਫ਼ਤ-ਸਾਲਾਹਕਰਦਾਹੈ, ਆਪਹੀਆਪਣੇਨਾਮ-ਰਸਨਾਲਰੱਜਦਾਹੈ॥੪॥੩॥
آپے آپِ سلاہدا پِیارا جن نانک ہرِ رسِ دھ٘راپےَ ॥੪॥੩॥
اے خادم نانک۔ خدا خود ہی اپنی حمدوثناہ ہے کرتا خود سیر بھی اس کے لطف سے ہوتا ہے ۔

ਸੋਰਠਿਮਹਲਾ੪॥
sorath mehlaa 4.
Raag Sorath, Fourth Guru:

سورٹھِ مہلا ੪॥
ਆਪੇਕੰਡਾਆਪਿਤਰਾਜੀਪ੍ਰਭਿਆਪੇਤੋਲਿਤੋਲਾਇਆ॥
aapay kandaa aap taraajee parabh aapay tol tolaa-i-aa.God Himself is the balance, Himself the balancing pointer, He Himself has weighed the world and kept it in balance.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਤੱਕੜੀਹੈਆਪਹੀਤੱਕੜੀਦੀਸੂਈਹੈ, ਪ੍ਰਭੂਨੇਆਪਹੀਵੱਟੇਨਾਲ (ਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀਨੂੰਤੋਲਿਆ (ਹੁਕਮਵਿਚਰੱਖਿਆ) ਹੋਇਆਹੈ
آپے کنّڈا آپِ تراجیِ پ٘ربھِ آپے تولِ تولائِیا ॥
کنڈا ۔ چھوٹی تگڑی ۔ جو قیمتی اشیا تولنے کے لئے استعمال کیجاتی ہے
خدا خود ہی چھوٹے اور بڑے پیمانے کا ترازو ہے ۔ اور خود تول تولنے کا پیمانہ مراد کٹے

ਆਪੇਸਾਹੁਆਪੇਵਣਜਾਰਾਆਪੇਵਣਜੁਕਰਾਇਆ॥
aapay saahu aapay vanjaaraa aapay vanaj karaa-i-aa.
God Himself is the banker, Himself is the trader and Himself makes the trades.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਸ਼ਾਹੂਕਾਰਹੈ, ਆਪਹੀਵਣਜਕਰਨਵਾਲਾਹੈ, ਆਪਹੀਵਣਜਕਰਰਿਹਾਹੈ।
آپے ساہُ آپے ۄنھجارا آپے ۄنھجُ کرائِیا ॥
۔ ونجارا۔ سوداگر۔ ونج ۔ بیو پار ۔ سوداگری
خود شاہو کار اور خودسوداگر یا سیو بیوپاری اور سوداگری کرتا اور کراتا ہے
ਆਪੇਧਰਤੀਸਾਜੀਅਨੁਪਿਆਰੈਪਿਛੈਟੰਕੁਚੜਾਇਆ॥੧॥
aapay Dhartee saajee-an pi-aarai pichhai tank charhaa-i-aa. ||1||
God Himself fashioned the world and kept it in perfect balance just by His one command. ||1||
ਪ੍ਰਭੂਨੇਆਪਹੀਧਰਤੀਪੈਦਾਕੀਤੀਹੋਈਹੈ (ਮਰਯਾਦਾਰੂਪਤੱਕੜੀਦੇ) ਪਿਛਲੇਛਾਬੇਵਿਚਚਾਰਮਾਸੇਦਾਵੱਟਾਰੱਖਕੇ ( ਇਸਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀਨੂੰਆਪਣੀਮਰਯਾਦਾਵਿਚਰੱਖਿਆਹੋਇਆਹੈ॥੧॥

آپے دھرتیِ ساجیِئنُ پِیارےَ پِچھےَ ٹنّکُ چڑائِیا ॥੧॥
ساجین ۔ بنائی ۔ ٹنک چڑھائیا۔ پیمانہ جو صر ۔ ماشے کا ہوتا ہے ۔
ہر چیز خدا نے ماپ تو اور اندازے کی مطابق زیر ضبط رکھا ہوا ہےخود مزین پیدا کی ہے اور اسے زیر نظام اورضبط رکھا ہےوا ہے (1)
ਮੇਰੇਮਨਹਰਿਹਰਿਧਿਆਇਸੁਖੁਪਾਇਆ॥
mayray man har har Dhi-aa-ay sukh paa-i-aa.
O’ my mind, always meditate God’s Name; whoever has done, has received celestial peace.
ਹੇਮੇਰੇਮਨ! ਸਦਾਪਰਮਾਤਮਾਦਾਸਿਮਰਨਕਰ, (ਜਿਸਕਿਸੇਨੇਸਿਮਰਿਆਹੈ, ਉਸਨੇ) ਸੁਖਪਾਇਆਹੈ।
میرے من ہرِ ہرِ دھِیاءِ سُکھُ پائِیا ॥
اے دل خدا کی یاد سے آرام حاصل ہوتا ہے

ਹਰਿਹਰਿਨਾਮੁਨਿਧਾਨੁਹੈਪਿਆਰਾਗੁਰਿਪੂਰੈਮੀਠਾਲਾਇਆ॥ਰਹਾਉ॥
har har naam niDhaan hai pi-aaraa gur poorai meethaa laa-i-aa. rahaa-o.
God’s Name is a treasure of bliss, whosoever has followed the Guru’s teachings, the perfect Guru has made it seem pleasing to that person. ||Pause||
ਪਰਮਾਤਮਾਦਾਨਾਮਸਾਰੇਸੁਖਾਂਦਾਖ਼ਜ਼ਾਨਾਹੈ (ਜੇਹੜਾਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੀਸ਼ਰਨਪਿਆਹੈ) ਪੂਰੇਗੁਰੂਨੇਉਸਨੂੰਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਮਿੱਠਾਅਨੁਭਵਕਰਾਦਿੱਤਾਹੈ॥ਰਹਾਉ॥
ہرِ ہرِ نامُ نِدھانُ ہےَ پِیارا گُرِ پوُرےَ میِٹھا لائِیا ॥ رہاءُ ॥
میٹھا۔ پیارا۔ رہاؤ۔ ورتد۔ جاری ہے
الہٰی نام سچ وحقیقت آرام و آسائش کا خزانہ ہے کامل مرشد اسکا اپنے مرید کو پیار لگاتا ہے اور اس کے لطف کا احساسا کراتا ہے ۔ رہاو۔
ਆਪੇਧਰਤੀਆਪਿਜਲੁਪਿਆਰਾਆਪੇਕਰੇਕਰਾਇਆ॥
aapay Dhartee aap jal pi-aaraa aapay karay karaa-i-aa.
Dear God Himself is the earth, Himself the water, and He Himself does and gets everything done.
ਪ੍ਰੀਤਮਪ੍ਰਭੂਆਪਜਮੀਨਤੇਆਪੇਹੀਪਾਣੀਹੈਅਤੇਆਪਹੀਕਰਦਾਤੇਹੋਰਨਾਂਤੋਂਕਰਾਉਂਦਾਹੈ।
آپے دھرتیِ آپِ جلُ پِیارا آپے کرے کرائِیا ॥
خود ہی زمین اور خود ہی پانی ہے خدا خود کرنے و الا اورکرانے وال اہے ۔
ਆਪੇਹੁਕਮਿਵਰਤਦਾਪਿਆਰਾਜਲੁਮਾਟੀਬੰਧਿਰਖਾਇਆ॥
aapay hukam varatdaa pi-aaraa jal maatee banDh rakhaa-i-aa.God Himself is controlling everything according to His Commands; his command keeps the water and the land bound together.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਆਪਣੇਹੁਕਮਅਨੁਸਾਰਹਰਥਾਂਕਾਰਚਲਾਰਿਹਾਹੈ, ਪਾਣੀਨੂੰਮਿੱਟੀਨਾਲ (ਉਸਨੇਆਪਣੇਹੁਕਮਵਿਚਹੀ) ਬੰਨ੍ਹਰੱਖਿਆਹੈ
آپے ہُکمِ ۄرتدا پِیارا جلُ ماٹیِ بنّدھِ رکھائِیا ॥
۔ ورتد۔ جاری ہے ۔ جل ماٹی بندھ رکھائیا۔ پانی اور زمین جو مختلف اشیا ہیں۔ آپس میں بندھا ہوا ہے ۔
خدا خود ہی اپنے فرمانکی مطابق کام چلا رہا ہے پانی اورمٹی کو آپس میں باندھ رکھا ہے ۔
ਆਪੇਹੀਭਉਪਾਇਦਾਪਿਆਰਾਬੰਨਿਬਕਰੀਸੀਹੁਹਢਾਇਆ॥੨॥
aapay hee bha-o paa-idaa pi-aaraa bann bakree seehu hadhaa-i-aa. ||2||He
Himself has instilled fear in the ocean that it cannot dissolve the land, as if tying a goat and a lion together and making them walk together. ||2||
(ਪਾਣੀਵਿਚਉਸਨੇ) ਆਪਹੀਆਪਣਾਡਰਪਾਰੱਖਿਆਹੈ, (ਮਾਨੋ) ਬੱਕਰੀਸ਼ੇਰਨੂੰਬੰਨ੍ਹਕੇਫਿਰਾਰਹੀਹੈ॥੨॥
آپے ہیِ بھءُ پائِدا پِیارا بنّنِ بکریِ سیِہُ ہڈھائِیا ॥੨॥
۔ بھؤ۔ پیار۔
جیسے شیر اور بکری بادھ کر پھرا رہا ہے اورخود خوف ڈال رکھا ہے (2)