Urdu-Raw-Page-604

ਸਬਦਿਮਰਹੁਫਿਰਿਜੀਵਹੁਸਦਹੀਤਾਫਿਰਿਮਰਣੁਨਹੋਈ॥
sabad marahu fir jeevhu sad hee taa fir maran na ho-ee.
If by following the Guru’s word you become free of vices, then you would live a spiritual life forever and you would never die a spiritual death.
ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਵਿਚਜੁੜਕੇਵਿਕਾਰਾਂਵਲੋਂਅਛੋਹਹੋਜਾਵੋ, ਫਿਰਸਦਾਲਈਹੀਆਤਮਕਜੀਵਨਜੀਊਂਦੇਰਹੋਗੇ, ਫਿਰਕਦੇਆਤਮਕਮੌਤਨੇੜੇਨਹੀਂਢੁਕੇਗੀ।
سبدِ مرہُ پھِرِ جیِۄہُ سد ہیِ تا پھِرِ مرنھُ ن ہوئیِ ॥
سبد۔ کلمہ کلام۔
سبد سے برائیوں بد اخلاقیوں کی موت ہوجاتی ہے اور ہمیشہ کے لئے زندگی روحانی واخلاقی طور پر پاک ہوجاتی ہے

ਅੰਮ੍ਰਿਤੁਨਾਮੁਸਦਾਮਨਿਮੀਠਾਸਬਦੇਪਾਵੈਕੋਈ॥੩॥
amrit naam sadaa man meethaa sabday paavai ko-ee. ||3||
The ambrosial Naam is ever-sweet to the mind, however it is only a rare person who receives it through the Guru’s word. ||3||
ਆਤਮਕਜੀਵਨਦੇਣਵਾਲਾਨਾਮਸਦਾਲਈਮਨਵਿਚਮਿੱਠਾਲਗਦਾਹੈਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਰਾਹੀਂਕੋਈਵਿਰਲਾਜਣਾਹੀਇਸਨੂੰਪ੍ਰਾਪਤਕਰਦਾਹੈ॥੩॥
انّم٘رِتُ نامُ سدا منِ میِٹھا سبدے پاۄےَ کوئیِ ॥੩॥
اور روحانی حقیقت ہمیشہ میٹھا مرا و پیار ہوجاتا ہے ۔ جسے کوئی ہی پاتا ہے (3)

ਦਾਤੈਦਾਤਿਰਖੀਹਥਿਅਪਣੈਜਿਸੁਭਾਵੈਤਿਸੁਦੇਈ॥
daatai daat rakhee hath apnai jis bhaavai tis day-ee.
The benefactor God has kept this gift of Naam under His own control; He gives to whoever He pleases.
ਦਾਤਾਰਨੇਨਾਮਦੀਇਹਦਾਤਿਆਪਣੇਹੱਥਵਿਚਰੱਖੀਹੋਈਹੈ, ਜਿਸਨੂੰਚਾਹੁੰਦਾਹੈਉਸਨੂੰਦੇਦੇਂਦਾਹੈ।
داتےَ داتِ رکھیِ ہتھِ اپنھےَ جِسُ بھاۄےَ تِسُ دیئیِ ॥
دانے ۔ سخی ۔ سخاوت کرنے والاے ۔ خدا ۔ دات۔ نعمت۔ بھاوے ۔ چاہے
یہ نعمت اپنے ہاتھ یعنی زیر اختیارات رکھی ہوئی ہے جسے چاہتا ہےد یتا ہے

ਨਾਨਕਨਾਮਿਰਤੇਸੁਖੁਪਾਇਆਦਰਗਹਜਾਪਹਿਸੇਈ॥੪॥੧੧॥
naanak naam ratay sukh paa-i-aa dargeh jaapeh say-ee. ||4||11||
O’ Nanak, being imbued with Naam, they enjoy spiritual peace here and are honored in God’s presence. ||4||11||
ਹੇਨਾਨਕ! ਨਾਮ-ਰੰਗਵਿਚਰੰਗੇਮਨੁੱਖਇਥੇਸੁਖਮਾਣਦੇਹਨ, ਅਤੇਪ੍ਰਭੂਦੀਹਜ਼ੂਰੀਵਿਚਆਦਰ-ਮਾਣਪਾਂਦੇਹਨ॥੪॥੧੧॥
نانک نامِ رتے سُکھُ پائِیا درگہ جاپہِ سیئیِ ॥੪॥੧੧॥
۔ درگیہہ جاپے ۔ الہٰی بارگاہ میں شہرت انہیں ہی ملتی ہے ۔
اے نانک الہٰی نام سچ و حقیقت میں محو و مجذوب ہونے سے سکھ ملتا ہے اور اسے ہی بارگاہ خدا میں شہرت ۔

ਸੋਰਠਿਮਹਲਾ੩॥
sorath mehlaa 3.
Raag Sorath, Third Guru:
سورٹھِ مہلا ੩॥
ਸਤਿਗੁਰਸੇਵੇਤਾਸਹਜਧੁਨਿਉਪਜੈਗਤਿਮਤਿਤਦਹੀਪਾਏ॥
satgur sayvay taa sahj Dhun upjai gat mattad hee paa-ay.
When one follows the Guru’s teachings, then divine melody wells up within and only then one is blessed with exalted intellect and supreme spiritual status.
ਜਦੋਂਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਂਦਾਹੈਤਦੋਂਉਸਦੇਅੰਦਰਆਤਮਕਅਡੋਲਤਾਦੀਰੌਚੱਲਪੈਂਦੀਹੈ।ਤਦੋਂਹੀਉੱਹਉੱਚੀਆਤਮਕਅਵਸਥਾਤੇਉੱਚੀਮਤਿਹਾਸਲਕਰਦਾਹੈ।
ستِگُر سیۄے تا سہج دھُنِ اُپجےَ گتِ متِ تد ہیِ پاۓ ॥
سہج دن ۔ روحانی سکون کے لطف میں سنگت کی لہریں۔ گت مت۔ علم ونجات
خدمت مرشد اور اس کے دئے ہوئے درس و کلام پر عمل کرنے سے اس کے ذہن میں روحانی و اخلاقی مستقل مزاجی کی لہریں اٹھتی ہیں۔ اس سے انسان بلند روحانی رتبہ اور عقل ہوش حاصل کرتا ہے
ਹਰਿਕਾਨਾਮੁਸਚਾਮਨਿਵਸਿਆਨਾਮੇਨਾਮਿਸਮਾਏ॥੧॥har kaa naam sachaa man vasi-aa naamay naam samaa-ay. ||1||
One realizes the eternal Name of God residing in the mind, and by meditating on Naam, one merges in Naam itself. ||1||
ਸਦਾਕਾਇਮਰਹਿਣਵਾਲਾਹਰਿ-ਨਾਮਮਨੁੱਖਦੇਮਨਵਿਚਆਵੱਸਦਾਹੈ, ਤੇ, ਮਨੁੱਖਸਦਾਨਾਮਵਿਚਹੀਲੀਨਰਹਿੰਦਾਹੈ॥੧॥
ہرِ کا نامُ سچا منِ ۄسِیا نامے نامِ سماۓ ॥੧॥
ہر کا نام ۔ الہٰی نام سچ و حقیقت ۔ نام ے نا سمائی ۔ سچ و حقیقت سے سچ و حقیقت میں محو و مجذوب ہوئے
اور صڈیوی الہٰی نام سچ و حقیقت دل میں بستی ہے اور انسان الہٰی نام سچ وحقیقت میں محو ومجذوب رہتا ہے(1)
ਬਿਨੁਸਤਿਗੁਰਸਭੁਜਗੁਬਉਰਾਨਾ॥
bin satgur sabh jag ba-uraanaa.
Without following the Guru’s teachings, the entire world is wandering insane.
ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਣਤੋਂਬਿਨਾਸਾਰਾਜਗਤ (ਮਾਇਆਦੇਮੋਹਵਿਚ) ਝੱਲਾਹੋਇਆਫਿਰਦਾਹੈ।
بِنُ ستِگُر سبھُ جگُ بئُرانا ॥
بغیر سچے مرشد تمام عالم دیوانگی میں ہے ۔ خودی پسند دنیاوی دولت کی محبت میں سر شار ذہنی طور پر نابینا ہے

ਮਨਮੁਖਿਅੰਧਾਸਬਦੁਨਜਾਣੈਝੂਠੈਭਰਮਿਭੁਲਾਨਾ॥ਰਹਾਉ॥
manmukh anDhaa sabad na jaanai jhoothai bharam bhulaanaa. rahaa-o.
A spiritually ignorant self-willed person does not understand the Guru’s word and remains lost in false beliefs and doubts. ||Pause||
ਆਪਣੇਮਨਦੇਪਿੱਛੇਤੁਰਨਵਾਲਾਅੰਨ੍ਹਾਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਨਾਲਡੂੰਘੀਸਾਂਝਨਹੀਂਪਾਂਦਾ।ਝੂਠੀਦੁਨੀਆਦੇਕਾਰਨਭਟਕਣਾਵਿਚਪੈਕੇਕੁਰਾਹੇਪਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ॥ਰਹਾਉ॥

منمُکھِ انّدھا سبدُ ن جانھےَ جھوُٹھےَ بھرمِ بھُلانا ॥ رہاءُ ॥
اندھا ۔ عقل و شعور ہونے کی وجہ س ذہنی نابینا ۔ سبد نہ جانے ۔ کلام نہیں سمجھتا۔
اسے کچھ دکھائی نہیں دیتا سوچنے سے قاصرہے جھوٹے وہم و گمان میں گمراہ ہے ۔ رہاؤ۔
ਤ੍ਰੈਗੁਣਮਾਇਆਭਰਮਿਭੁਲਾਇਆਹਉਮੈਬੰਧਨਕਮਾਏ॥
tarai gun maa-i-aa bharam bhulaa-i-aa ha-umai banDhan kamaa-ay.
The three modes (power, vice, and virtue) of Maya have misled a person into illusion; therefore in his ego, he keeps creating more worldly bonds for himself.
ਮਨੁੱਖਤ੍ਰਿਗੁਣੀਮਾਇਆਦੀਭਟਕਣਾਵਿਚਪੈਕੇਕੁਰਾਹੇਪਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ, ਤੇ, ਹਉਮੈਦੇਕਾਰਨਮੋਹਦੇਬੰਧਨਵਧਾਣਵਾਲੇਕੰਮਹੀਕਰਦਾਹੈ।
ت٘رےَ گُنھ مائِیا بھرمِ بھُلائِیا ہئُمےَ بنّدھن کماۓ ॥
ہونمے ہندھن ۔ خودی کی غلامی ۔ بھلانا۔ گمراہی
تینوں اوصاف والی دنیاوی دولت وہم وگمان میں گمراہ کرکے خودی کی غلامی کے کام کرواتی ے ۔

ਜੰਮਣੁਮਰਣੁਸਿਰਊਪਰਿਊਭਉਗਰਭਜੋਨਿਦੁਖੁਪਾਏ॥੨॥
jaman maran sir oopar oobha-o garabh jon dukh paa-ay. ||2||
The cycle of birth and death keeps hovering over his head, and he keeps going through the womb, suffering in pain. ||2||
ਉਸਦੇਸਿਰਉਤੇਜਨਮਮਰਨਦਾਗੇੜਹਰਵੇਲੇਟਿਕਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ, ਤੇ, ਜਨਮਮਰਨਵਿਚਪੈਕੇਦੁੱਖਸਹਿੰਦਾਰਹਿੰਦਾਹੈ॥੨॥
جنّمنھُ مرنھُ سِر اوُپرِ اوُبھءُ گربھ جونِ دُکھُ پاۓ ॥੨॥
سراوپر اوبھو۔ سر پر گھڑا ہے ۔ گربھ ۔ پیٹ اندر
تناسک ہمشہ سر پر موجود رہتا ہے ۔ پیٹ میں رہنے کا عذاب برداشت کرتا ہے (2)
ਤ੍ਰੈਗੁਣਵਰਤਹਿਸਗਲਸੰਸਾਰਾਹਉਮੈਵਿਚਿਪਤਿਖੋਈ॥
tarai gun varteh sagal sansaaraa ha-umai vich patkho-ee.
The three modes of Maya are prevailing in the entire world; acting in ego, one loses his honor.
ਮਾਇਆਦੇਤਿੰਨਗੁਣਸਾਰੇਸੰਸਾਰਉੱਤੇਆਪਣਾਪਰਭਾਵਪਾਈਰੱਖਦੇਹਨ;ਮਨੁੱਖਹਉਮੈਵਿਚਫਸਕੇਇੱਜ਼ਤਗਵਾਲੈਂਦਾਹੈ।
ت٘رےَ گُنھ ۄرتہِ سگل سنّسارا ہئُمےَ ۄِچِ پتِ کھوئیِ ॥
) ترے گن ورتیہہ ۔ تین اوصاف ۔ رائج ہیں۔ پت ۔ عزت
سارے عالم پر تینوں اوصاف پانے تاثرات قائم رکھتے ہیں اور خودی میں عزت گنواتے ہیں
ਗੁਰਮੁਖਿਹੋਵੈਚਉਥਾਪਦੁਚੀਨੈਰਾਮਨਾਮਿਸੁਖੁਹੋਈ॥੩॥
gurmukh hovai cha-uthaa pad cheenai raam naam sukh ho-ee. ||3||
One who follows the Guru’s teachings, recognize the fourth state of celestial bliss and lives in peace by meditating on God’s Name. ||3||
ਜੇਹੜਾਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਂਦਾਹੈ, ਉਹਬੈਕੁੰਠੀਅਨੰਦਦੀਚੌਥੀਅਵਸਥਾਨੂੰਪਛਾਣਲੈਂਦਾਹੈਤੇਪਰਮਾਤਮਾਦੇਨਾਮਵਿਚਟਿਕਕੇਆਤਮਕਆਨੰਦਮਾਣਦਾਹੈ॥੩॥
گُرمُکھِ ہوۄےَ چئُتھا پدُ چیِنےَ رام نامِ سُکھُ ہوئیِ ॥੩॥
۔ چوتھا پد۔ وہ روحانی رتبہ جہاں تینوں اوصاف بے اثر ہوجاتے ہیں اپنا تاثر نہیں ڈال سکے
مرید مرشد ہوکر ہ چوتھے درجے کی جو تینوں اوصاف سے بلند ہے سمجھ آتی ہے الہٰی نام سچ وحقیقت سے سکھلتا ہے ۔ مراد ذہنی و روحانی سکون حاصل ہوتا ہے (3)
ਤ੍ਰੈਗੁਣਸਭਿਤੇਰੇਤੂਆਪੇਕਰਤਾਜੋਤੂਕਰਹਿਸੁਹੋਈ॥
tarai gun sabhtayray too aapay kartaa jo too karahi so ho-ee.
O’ God, these three modes of Maya are Yours; You Yourself are the creator of all and whatever You do that happens.
ਹੇਪ੍ਰਭੂ! ਮਾਇਆਦੇਇਹਤਿੰਨੇਗੁਣਤੇਰੇਹਨ, ਤੂੰਆਪਹੀਸਭਦਾਪੈਦਾਕਰਨਵਾਲਾਹੈਂਤੇਉਹੀਹੁੰਦਾਹੈਜੋਤੂੰਕਰਦਾਹੈਂ।
ت٘رےَ گُنھ سبھِ تیرے توُ آپے کرتا جو توُ کرہِ سُ ہوئیِ ॥
اے خدا یہ تینوں اوصاف تیرے ہی ہیں اور تیرے پیدا کئے ہوئے ہیں وہی ہوتا ہے جو تو کرتا ہے
ਨਾਨਕਰਾਮਨਾਮਿਨਿਸਤਾਰਾਸਬਦੇਹਉਮੈਖੋਈ॥੪॥੧੨॥
naanak raam naam nistaaraa sabday ha-umai kho-ee. ||4||12||
O’ Nanak, one gets rid of ego through the Guru’s word, and then through God’s Name, one is freed from the three modes of Maya. ||4||12||
ਹੇਨਾਨਕ! ਪ੍ਰਭੂਦੇਨਾਮਵਿਚਜੁੜਿਆਂਮਾਇਆਦੇਤਿੰਨਗੁਣਾਂਤੋਂਪੂਰੀਖ਼ਲਾਸੀਹੁੰਦੀਹੈ।ਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਬਰਕਤਿਨਾਲਹੀਆਪਣੇਅੰਦਰੋਂ) ਹਉਮੈਦੂਰਕਰਸਕਦਾਹੈ॥੪॥੧੨॥
نانک رام نامِ نِستارا سبدے ہئُمےَ کھۄئی ॥4॥ 12 ॥
نستارا۔ نجات ۔ آزاد۔
اے ناک الہٰی نام سچ وحقیقت سے زہنی آزادی حاصل ہوتی ہے اور سبد وکلام یا سبق و واعظ مرشد سے خودی ختم ہوجاتی ہے ۔

ਸੋਰਠਿਮਹਲਾ੪ਘਰੁ੧
sorath mehlaa 4 ghar 1
Raag Sorath, Fourth Guru, First Beat:
سورٹھِ مہلا ੪ گھرُ ੧
ੴਸਤਿਗੁਰਪ੍ਰਸਾਦਿ॥
ik-oNkaar satgur parsaad.
One eternal God, realized by the grace of the True Guru:
ਅਕਾਲਪੁਰਖਇੱਕਹੈਅਤੇਸਤਿਗੁਰੂਦੀਕਿਰਪਾਨਾਲਮਿਲਦਾਹੈ।
ایک اونکار ستِگُر پ٘رسادِ ॥
ایک ابدی خدا جو گرو کے فضل سے معلوم ہوا
ਆਪੇਆਪਿਵਰਤਦਾਪਿਆਰਾਆਪੇਆਪਿਅਪਾਹੁ॥
aapay aap varatdaa pi-aaraa aapay aap apaahu.
God Himself pervades everywhere and He Himself remains detached.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਹਰਥਾਂਮੌਜੂਦਹੈਅਤੇਆਪਹੀਨਿਰਲੇਪਭੀਹੈ।
آپے آپِ ۄرتدا پِیارا آپے آپِ اپاہُ ॥
ورتد۔ کررہا ۔ اپاہو۔ اپنے آپ ۔
خدا خود ہی ہر جگہ موجود ہے اور اپنے آپ میں واحد بھی عالم کا سوداگر اور
ਵਣਜਾਰਾਜਗੁਆਪਿਹੈਪਿਆਰਾਆਪੇਸਾਚਾਸਾਹੁ॥
vanjaaraa jag aap hai pi-aaraa aapay saachaa saahu.
God Himself is the divine merchant in the world and He Himself is the eternal banker.
ਜਗਤ-ਵਣਜਾਰਾਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਹੈਅਤੇਆਪਹੀਸਦਾਕਾਇਮਰਹਿਣਵਾਲਾਸ਼ਾਹੂਕਾਰਹੈ।
ۄنھجارا جگُ آپِ ہےَ پِیارا آپے ساچا ساہُ ॥
ونجار۔ بیوپاری ۔ سوداگری ۔ ساچا ساہو۔ سچا ساہو کار
بیپاری بھی اور آپ ہی سچا ساہوکار پونجی یا سرمایہ عنایت کرنے والا ساہو کار ۔
ਆਪੇਵਣਜੁਵਾਪਾਰੀਆਪਿਆਰਾਆਪੇਸਚੁਵੇਸਾਹੁ॥੧॥
aapay vanaj vapaaree-aa pi-aaraa aapay sach vaysaahu. ||1||
He Himself is the commodity, the divine merchant, and Himself the eternal wealth. ||1||
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਵਣਜਹੈ, ਆਪਹੀਵਪਾਰਕਰਨਵਾਲਾਹੈ, ਆਪਸਦਾ-ਥਿਰਰਹਿਣਵਾਲਾਸਰਮਾਇਆਹੈ॥੧॥
آپے ۄنھجُ ۄاپاریِیا پِیارا آپے سچُ ۄیساہُ ॥੧॥
سچ و ساہو ۔ سچا اعتبار ۔ یقین ۔ بھروسا
خدا خو دی ۔ بیوپار ۔ تجارت۔ خود ہی تجارت کرنے والا بیوپاری خود ہی صدیوی سرمایہ جس پر بھروسا یا یقین کے لائق (1)
ਜਪਿਮਨਹਰਿਹਰਿਨਾਮੁਸਲਾਹ॥
jap man har har naam salaah.
O’ my mind, always lovingly remember God and keep singing His praises.
ਹੇਮੇਰੇਮਨ! ਸਦਾਪਰਮਾਤਮਾਦਾਨਾਮਸਿਮਰਿਆਕਰ, ਸਿਫ਼ਤ-ਸਾਲਾਹਕਰਿਆਕਰ।
جپِ من ہرِ ہرِ نامُ سلاہ ॥
تام صلاح الہٰی نام ۔ سچ وحقیقت کی صلاحتا کر۔
اے دل الہٰی نام سچ وحقیقت یاد کر اور اس کی صفت صلاح کر یہ رحمت مرشد سے پیار ے خدا سے ملاپ حاصل ہوتا ہے
ਗੁਰਕਿਰਪਾਤੇਪਾਈਐਪਿਆਰਾਅੰਮ੍ਰਿਤੁਅਗਮਅਥਾਹ॥ਰਹਾਉ॥
gur kirpaa tay paa-ee-ai pi-aaraa amrit agam athaah. rahaa-o.
It is only through the Guru’s grace that one can realize that beloved-God, who is immortal, unapproachable and unfathomable. ||Pause||
ਗੁਰੂਦੀਮੇਹਰਨਾਲਹੀਉਹਪਿਆਰਾਪ੍ਰਭੂਮਿਲਸਕਦਾਹੈ, ਜੋਅਮਰਹੈ, ਜੋਅਪਹੁੰਚਹੈ, ਤੇ, ਜੋਬਹੁਤਡੂੰਘਾਹੈ॥ਰਹਾਉ॥
گُر کِرپا تے پائیِئےَ پِیارا انّم٘رِتُ اگم اتھاہ ॥ رہاءُ ॥
انّم٘رِت ۔ آب حیات۔ روحانی زندگی بنانے والا پانی ۔ اگم ۔ جس تک انسانی رسائی نہ ہو سکے ۔ تھاہ ۔ جسکا اندزہ نہ لگایا جا سکے ۔ رہاؤ۔
جو آپ حیات ہے جس سے انسان کی روحانی اور اخلاقی با شعور بنتی ہے جس تک انسنای رسائی محال ہی نہیں تقریبا نا ممکن جیسی ہے ۔ جسکا اندازہ بھی نہیں کیا جا سکتا ۔ رہاؤ۔
ਆਪੇਸੁਣਿਸਭਵੇਖਦਾਪਿਆਰਾਮੁਖਿਬੋਲੇਆਪਿਮੁਹਾਹੁ॥
aapay sun sabh vaykh-daa pi-aaraa mukh bolay aap muhaahu.
God Himself listens to the prayers of the humans and takes care of all; He Himself speaks through the mouths of everyone.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਜੀਵਾਂਦੀਆਂਅਰਦਾਸਾਂਸੁਣਕੇਸਭਦੀਸੰਭਾਲਕਰਦਾਹੈ; ਆਪਹੀਸਾਰਿਆਂਦੇਮੂੰਹਾਂਦੁਆਰਾਬੋਲਦਾਹੈ।
آپے سُنھِ سبھ ۄیکھدا پِیارا مُکھِ بولے آپِ مُہاہُ ॥
خود ہی سب کی عرض داشتیں سنتا ہے اور سب پر نظر رکھتا ہے نگرانی کرتا ہے
ਆਪੇਉਝੜਿਪਾਇਦਾਪਿਆਰਾਆਪਿਵਿਖਾਲੇਰਾਹੁ॥
aapay ujharh paa-idaa pi-aaraa aap vikhaalay raahu.
The beloved-God Himself leads the beings into the wilderness, and Himself shows the righteous way of living.
ਪਿਆਰਾਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਜੀਵਾਂਨੂੰ) ਕੁਰਾਹੇਪਾਦੇਂਦਾਹੈ, ਆਪਹੀ (ਜ਼ਿੰਦਗੀਦਾਸਹੀ) ਰਸਤਾਵਿਖਾਂਦਾਹੈ।
آپے اُجھڑِ پائِدا پِیارا آپِ ۄِکھالے راہُ ॥
آپ۔ اوجھڑ۔ غلط راستے ۔ گمراہ۔ دکھالے راہ۔ راستہ دکھاتا ہے ۔ مراد صحیح راستے ڈالتا ہے
اور آپ ہی شریں زبان شریں الفاظ نکلاتا ہے ۔ اور خودہ ہی رہبر ہوکر صحیح راستہ دکھاتاہے
ਆਪੇਹੀਸਭੁਆਪਿਹੈਪਿਆਰਾਆਪੇਵੇਪਰਵਾਹੁ॥੨॥
aapay hee sabh aap hai pi-aaraa aapay vayparvaahu. ||2||
Dear God Himself is present everywhere and He Himself is carefree. ||2||
ਪ੍ਰਭੂਹਰਥਾਂਆਪਹੀਆਪਹੈ, ਅਤੇਆਪਹੀਬੇ-ਪਰਵਾਹਹੈ॥੨॥
آپے ہیِ سبھُ آپِ ہےَ پِیارا آپے ۄیپرۄاہُ ॥੨॥
۔ اتنا سب کچھ ہے خود خدا مگر اس کے باجود لاپراہ ہے (2)

ਆਪੇਆਪਿਉਪਾਇਦਾਪਿਆਰਾਸਿਰਿਆਪੇਧੰਧੜੈਲਾਹੁ॥
aapay aap upaa-idaa pi-aaraa sir aapay DhanDh-rhai laahu.
God Himself creates all beings, and He Himself engages them to different tasks.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਸਭਜੀਵਾਂਨੂੰ) ਪੈਦਾਕਰਦਾਹੈ, ਆਪਹੀਹਰੇਕਜੀਵਨੂੰਕੰਮਲਾਉਦਾਂਹੈ।
آپے آپِ اُپائِدا پِیارا سِرِ آپے دھنّدھڑےَ لاہُ ॥
اپاینڈ۔ پیدا کرتا ہے ۔ سر۔ ذمے ۔ دھندڑے ۔ کاروبار۔
خدا خود پیدا کرتا ہے خود ہی ہر ایک کسی ذمہ داری کاروبارکے لئے لگاتا ہے
ਆਪਿਕਰਾਏਸਾਖਤੀਪਿਆਰਾਆਪਿਮਾਰੇਮਰਿਜਾਹੁ॥
aap karaa-ay saakh-tee pi-aaraa aap maaray mar jaahu.
The beloved-God Himself creates the creation and when He Himself withdraws the life breath, the creature dies .

ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਜੀਵਾਂਦੀ) ਬਣਤਰਬਣਾਂਦਾਹੈ, ਆਪਹੀਮਾਰਦਾਹੈ, (ਤਾਂਉਸਦਾਪੈਦਾਕੀਤਾਜੀਵ) ਮਰਜਾਂਦਾਹੈ।
آپِ کراۓ ساکھتیِ پِیارا آپِ مارے مرِ جاہُ ॥
سکھتی ۔ بناوٹ۔ منصوبہ۔ پتن ۔ وہ جگہ جہاں سے درا یا ندی عبور کی جاتی ہے
خودہی منصوبے بناتا ہے زندگی کے اور خو دہی مٹا دیتا ہے ۔

ਆਪੇਪਤਣੁਪਾਤਣੀਪਿਆਰਾਆਪੇਪਾਰਿਲੰਘਾਹੁ॥੩॥
aapay patan paat-nee pi-aaraa aapay paar langhaahu. ||3||
God Himself is the wharf, Himself the boatman and He Himself ferries people across the worldly ocean of vices . ||3||
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਸੰਸਾਰ-ਨਦੀਉਤੇ) ਪੱਤਣਹੈ, ਆਪਹੀਮਲਾਹਹੈ, ਆਪਹੀ (ਜੀਵਾਂਨੂੰ) ਪਾਰਲੰਘਾਂਦਾਹੈ॥੩॥
آپے پتنھُ پاتنھیِ پِیارا آپے پارِ لنّگھاہُ ॥੩॥
خود ہی دریا کا کنارہ دیرا عبور کرنے کا اور خود ہی ملاح زندگی کے دریا کو عبور کرانے والا (3)

ਆਪੇਸਾਗਰੁਬੋਹਿਥਾਪਿਆਰਾਗੁਰੁਖੇਵਟੁਆਪਿਚਲਾਹੁ॥
aapay saagar bohithaa pi-aaraa gur khayvat aap chalaahu.
The beloved-God Himself is the worldly ocean and the ship; becoming a captain in the form of the Guru, He steers this ship.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਸੰਸਾਰ- ਸਮੁੰਦਰਹੈ, ਆਪਹੀਜਹਾਜ਼ਹੈ, ਆਪਹੀਗੁਰੂ-ਮਲਾਹਹੋਕੇਜਹਾਜ਼ਨੂੰਚਲਾਂਦਾਹੈ।
آپے ساگرُ بوہِتھا پِیارا گُرُ کھیۄٹُ آپِ چلاہُ ॥
ساگر۔ سمندر۔ بوہتھا ۔ جہاز
خو دہی سمندر ہے زندگیوں کا خود ہی جہاز ہے اور خود ہی مرشد کی شکل میں اسکا ملاح
ਆਪੇਹੀਚੜਿਲੰਘਦਾਪਿਆਰਾਕਰਿਚੋਜਵੇਖੈਪਾਤਿਸਾਹੁ॥
aapay hee charh langh-daa pi-aaraa kar choj vaykhai paatisaahu.
Dear God Himself rides the ship, crosses over the worldly ocean, and Himself performs and watches His wondrous play.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਜਹਾਜ਼ਵਿਚਚੜ੍ਹਕੇਪਾਰਲੰਘਦਾਹੈ।ਪ੍ਰਭੂ-ਪਾਤਿਸ਼ਾਹਆਪਣੇਰਚੇਹੋਏਕੌਤਕਾਂਨੂੰਦੇਖਦਾਹੈ।
آپے ہیِ چڑِ لنّگھدا پِیارا کرِ چوج ۄیکھےَ پاتِساہُ ॥
خود ہی کرتا ہے سواری جہاز کی اور تماشے کرکے ہے دیکتھا ۔
ਆਪੇਆਪਿਦਇਆਲੁਹੈਪਿਆਰਾਜਨਨਾਨਕਬਖਸਿਮਿਲਾਹੁ॥੪॥੧॥
aapay aap da-i-aal hai pi-aaraa jan naanak bakhas milaahu. ||4||1||
O’ Nanak, dear God Himself is merciful; forgiving people He unites them with Himself. ||4||1||
ਹੇਨਾਨਕ! ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਦਇਆਦਾਸੋਮਾਹੈ, ਆਪਹੀਬਖ਼ਸ਼ਸ਼ਕਰਕੇਜੀਵਾਂਨੂੰਆਪਣੇਨਾਲਮਿਲਾਲੈਂਦਾਹੈ॥੪॥੧॥
آپے آپِ دئِیالُ ہےَ پِیارا جن نانک بکھسِ مِلاہُ ॥੪॥੧॥
اے نانک۔ خدا خدا ہی رحمتوںکا ہے چشمہ خودہی رحمت سے اپنی اپناملاپ کراتاہے ۔

ਸੋਰਠਿਮਹਲਾ੪ਚਉਥਾ॥
sorath mehlaa 4 cha-uthaa.
Raag Sorath, Fourth Guru:
سورٹھِ مہلا ੪ چئُتھا ॥
ਆਪੇਅੰਡਜਜੇਰਜਸੇਤਜਉਤਭੁਜਆਪੇਖੰਡਆਪੇਸਭਲੋਇ॥
aapay andaj jayraj saytaj ut-bhuj aapay khand aapay sabh lo-ay.
God Himself is the four forms of creation ( egg, womb, sweat and earth); He Himself is the continents of all the worlds.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਚਾਰੇਖਾਣੀਆਂ) ਅੰਡਜਜੇਰਜਸੇਤਜਉਤਭੁਜਹੈ, ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਧਰਤੀਦੇਨੌ) ਖੰਡਹੈ, ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀ (ਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀਦੇ) ਸਾਰੇਭਵਨਹੈ।
آپے انّڈج جیرج سیتج اُتبھُج آپے کھنّڈ آپے سبھ لوءِ ॥
انڈج ۔ انڈوں سے پیدا ہونے جانداروں کی کان ۔ جیرج ۔ جیہ سے پیدا ہونے والوں کی سیج
خدا خود ہی چاروں کانیں انڈج ۔ جیرج ۔ سیتج ۔ اتبھج ۔ جس سےکائنات پیدا ہوتی ہے آپ ہے
ਆਪੇਸੂਤੁਆਪੇਬਹੁਮਣੀਆਕਰਿਸਕਤੀਜਗਤੁਪਰੋਇ॥
aapay soot aapay baho manee-aa kar saktee jagat paro-ay.
God Himself is the thread, and He Himself is many beads in the form living beings; through His almighty Power, He strings the world.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਧਾਗਾਹੈ, ਆਪਹੀਅਨੇਕਾਂਮਣਕੇ (ਜੀਵ )ਹੈ, ਆਪਣੀਤਾਕਤਬਣਾਕੇਜਗਤਨੂੰਧਾਗੇਵਿਚਪ੍ਰੋਂਦਾਹੈ।
آپے سوُتُ آپے بہُ منھیِیا کرِ سکتیِ جگتُ پروءِ ॥
سوت۔ دھاگا۔ بہو متیا۔ من کے ۔ کر سکتی ۔ طاقت وقوت سے ۔ جگت پروے ۔دنیاوی مالا میں پروئے ۔
۔ خو دہی سوت یا دھاگا ۔ اور خود ہی منکے ۔ خود زمین کے براعظم اور اس کے آبدیاں غرض یہ کہ ضبط و نظام کا دھاگا اور خو ہی اس میں پرونے کے لے نظم و نسق کے بیشمار منکے جن سےکائنات قدرت بنتی ہے