Urdu-Raw-Page-603

ਬਿਨੁਗੁਰਪ੍ਰੀਤਿਨਊਪਜੈਭਾਈਮਨਮੁਖਿਦੂਜੈਭਾਇ॥
bin gur pareet na oopjai bhaa-ee manmukhdoojai bhaa-ay.
O’ brother, love for God does not well up without the Guru’s teachings, but self-willed person remains engrossed in the love of duality
ਹੇਭਾਈ! ਗੁਰੂਤੋਂਬਿਨਾਪ੍ਰਭੂਵਿਚਪਿਆਰਪੈਦਾਨਹੀਂਹੁੰਦਾ, ਪਰਮਨਮੁਖਹੋਰਸਦੇਪਿਆਰਵਿਚਟਿਕਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ , ।

بِنُ گُر پ٘ریِتِ ن اوُپجےَ بھائیِ منمُکھِ دوُجےَ بھاءِ ॥
مرشد کے بغیر خدا سے پیار پیدا نہیں ہو سکتا خودی پسند انسان خدا کے علاوہ دوسرں ے محبت کرتا ہے ۔

ਤੁਹਕੁਟਹਿਮਨਮੁਖਕਰਮਕਰਹਿਭਾਈਪਲੈਕਿਛੂਨਪਾਇ॥੨॥
tuh kuteh manmukh karam karahi bhaa-ee palai kichhoo na paa-ay. ||2||
O’ brother, the ritualistic deeds performed by the self-willed persons prove useless, as if they are thrashing chaff which doesn’t yield anything. ||2||
ਹੇਭਾਈ! ਮਨਮੁਖਜੋਭੀਧਾਰਮਿਕਕੰਮਕਰਦੇਹਨਉਹਮਾਨੋਤੁਹਹੀਕੁੱਟਦੇਹਨ, ਉਹਨਾਂਨੂੰਹਾਸਲਕੁਝਨਹੀਂਹੁੰਦਾ॥੨॥

تُہ کُٹہِ منمُکھ کرم کرہِ بھائیِ پلےَ کِچھوُ ن پاءِ ॥੨॥
۔ پرالی توڑییا چھلکے کوٹتا ہے مراد بیکار کام کرتا ہے ۔ جس سے کچھ ملتا نہیں لا حاصل (2)
ਗੁਰਮਿਲਿਐਨਾਮੁਮਨਿਰਵਿਆਭਾਈਸਾਚੀਪ੍ਰੀਤਿਪਿਆਰਿ॥
gur mili-ai naam man ravi-aa bhaa-ee saachee pareet pi-aar.
O’ brother, on meeting and following the Guru’s teachings, Naam prevails in the mind, and one gets imbued with the love and affection for the eternal God.
ਹੇਭਾਈ! ਗੁਰਾਂਨਾਲਮਿਲਕੇਨਾਮਮਨਵਿਚਜਾਂਦਾਹੈ, ਸਦਾ-ਥਿਰਪ੍ਰਭੂਦੀਪ੍ਰੀਤਿਤੇਪਿਆਰਹਿਰਦੇਵਿਚਵਸਜਾਂਦੇਹਨ।

گُر مِلِئےَ نامُ منِ رۄِیا بھائیِ ساچیِ پ٘ریِتِ پِیارِ॥
نام میں رویا ۔ نام یعنی سچ و حقیقت
اے بھائی ، گرو کی تعلیمات سے ملنے اور ان کی پیروی کرنے پر ، ذہن میں نام غالب ہوتا ہے اور ابدی خدا سے پیار پیدا ہوتا ہے
ਸਦਾਹਰਿਕੇਗੁਣਰਵੈਭਾਈਗੁਰਕੈਹੇਤਿਅਪਾਰਿ॥੩॥
sadaa har kay gun ravai bhaa-ee gur kai hayt apaar. ||3||
O’ brother, through the Guru’s infinite love, one always keeps singing the praises of God. ||3||
ਹੇਭਾਈ! ਗੁਰੂਦੇਅਤੁੱਟਪਿਆਰਦੀਬਰਕਤਿਨਾਲਉਹਸਦਾਪਰਮਾਤਮਾਦੇਗੁਣਗਾਂਦਾਰਹਿੰਦਾਹੈ॥੩॥

سدا ہرِ کے گُنھ رۄےَ بھائیِ گُر کےَ ہیتِ اپارِ ॥੩॥
رویا۔ بسیا۔ ہیت اپار۔ لا محدود محبت (3)
مرشد کے ملاپ سے الہٰی نام سچ و حقیقت دل میں بسی ہے اور اسے سچا پریم پیار سے الہٰی حمدوثناہ کرتا رہتا ہے (3)
ਆਇਆਸੋਪਰਵਾਣੁਹੈਭਾਈਜਿਗੁਰਸੇਵਾਚਿਤੁਲਾਇ॥
aa-i-aa so parvaan hai bhaa-ee je gur sayvaa chit laa-ay.
O’ brother, approved becomes the advent of that person in the world who focuses his mind on following the teachings of the Guru.
ਹੇਭਾਈ! ਜੇਹੜਾਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੀਦੱਸੀਸੇਵਾਵਿਚਚਿੱਤਜੋੜਦਾਹੈਉਸਦਾਜਗਤਵਿਚਆਉਣਾਸਫਲਹੋਜਾਂਦਾਹੈ।

آئِیا سو پرۄانھُ ہےَ بھائیِ جِ گُر سیۄا چِتُ لاءِ ॥
اس دنیا مین پیدا ہونا اسی کا قبول ہوتا ہے جو در س مرشد پر عمل کرتا ہے خدمت مرشد کرتا ہے اسمیں دل لگاتا ہے ۔
ਨਾਨਕਨਾਮੁਹਰਿਪਾਈਐਭਾਈਗੁਰਸਬਦੀਮੇਲਾਇ॥੪॥੮॥
naanak naam har paa-ee-ai bhaa-ee gur sabdee maylaa-ay. ||4||8||
O’ Nanak, God’s Name is received through the Guru, and through his word Guru unites one with God. ||4||8||
ਹੇਨਾਨਕ! ਗੁਰੂਦੀਰਾਹੀਂਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਪ੍ਰਾਪਤਹੋਜਾਂਦਾਹੈ, ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਬਰਕਤਿਨਾਲਪ੍ਰਭੂਨਾਲਮਿਲਾਪਹੋਜਾਂਦਾਹੈ॥੪॥੮॥

نانک نامُ ہرِ پائیِئےَ بھائیِ گُر سبدیِ میلاءِ॥੪॥੮॥
اے نانک ۔ مرشد کے وسیلے سے الہٰی نام حاصل ہوتا ہے اور کلام کی برکت سے الہٰی ملاپ حاصل ہوتا ہے ۔

ਸੋਰਠਿਮਹਲਾ੩ਘਰੁ੧॥
sorath mehlaa 3 ghar 1.
Raag Sorath, Third Guru, First Beat:

سورٹھِ مہلا ੩ گھرُ ੧॥
ਤਿਹੀਗੁਣੀਤ੍ਰਿਭਵਣੁਵਿਆਪਿਆਭਾਈਗੁਰਮੁਖਿਬੂਝਬੁਝਾਇ॥
tihee gunee taribhavan vi-aapi-aa bhaa-ee gurmukh boojh bujhaa-ay.
O’ my brothers, the entire worlds are engrossed in the three modes of Maya (vice, virtue and power); the Guru makes a person understand this thing.
ਹੇਭਾਈ! ਸਾਰਾਜਗਤਮਾਇਆਦੇਤਿੰਨਾਂਗੁਣਾਂਵਿਚਹੀਫਸਿਆਪਿਆਹੈ।ਜੇਹੜਾਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੀਸ਼ਰਨਪੈਂਦਾਹੈ (ਗੁਰੂਉਸਨੂੰ) ਆਤਮਕਜੀਵਨਦੀਸਮਝਬਖ਼ਸ਼ਦਾਹੈ।

تِہیِ گُنھیِ ت٘رِبھۄنھُ ۄِیاپِیا بھائیِ گُرمُکھِ بوُجھ بُجھاءِ
تہی گنی ۔ تینوں اوصاف ۔ رجو ستو تمو۔ راج یا بڑا بننے کا خیال
سارا عالم تینوں اوصاف کی گرفت میں ہے مرشد کے وسیلے سے اس کی سمجھ آتی ہے
ਰਾਮਨਾਮਿਲਗਿਛੂਟੀਐਭਾਈਪੂਛਹੁਗਿਆਨੀਆਜਾਇ॥੧॥
raam naam lag chhootee-ai bhaa-ee poochhahu gi-aanee-aa jaa-ay. ||1||
O’ brother,we can be liberated from these modes of Maya by attuning to God’s Name; go and ask the divinely wise persons about this. ||1||
ਹੇਭਾਈ! ਪ੍ਰਭੂਦੇਨਾਮਵਿਚਲੀਨਹੋਕੇਮਾਇਆਦੇਤਿੰਨਾਂਗੁਣਾਂਤੋਂਬਚੀਦਾਹੈ, ਬੇਸ਼ੱਕਜਾਕੇਬ੍ਰਹਿਮਬੇਤਿਆਂਕੋਲੋਂਪੁੱਛਲੈ॥੧॥

رام نامِ لگِ چھوُٹیِئےَ بھائیِ پوُچھہُ گِیانیِیا جاءِ ॥੧॥
الہٰی نام سچ و حقیقت اپنا کر نجات حاصل ہوتی ہے ۔ ان سے پوچھو جنہیں روحانی زندگی کی سمجھ ہے
ਮਨਰੇਤ੍ਰੈਗੁਣਛੋਡਿਚਉਥੈਚਿਤੁਲਾਇ॥
man ray tarai gunchhod cha-uthai chit laa-ay.
O’ my mind, renounce these three modes of Maya and attune yourself to the fourth state where mind remains unaffected by these.
ਹੇਮੇਰੇਮਨ! ਮਾਇਆਦੇਤਿੰਨਗੁਣਾਂਦੇਪ੍ਰਭਾਵਨੂੰਛੱਡਕੇਉਸਅਵਸਥਾਵਿਚਟਿਕਜਿਥੇਇਹਨਾਂਤਿੰਨਾਂਦਾਜ਼ੋਰਨਹੀਂਪੈਂਦਾ।

من رے ت٘رےَ گُنھ چھوڈِ چئُتھےَ چِتُ لاءِ ॥
چت لائے ۔ دل لگا
اے میرے ذہن ، مایا کے ان تین طریقوں کو چھوڑ دو اور اپنے آپ کو چوتھی حالت میں شامل کرو جہاں ذہن ان سے متاثر نہیں ہوتا ہے۔
ਹਰਿਜੀਉਤੇਰੈਮਨਿਵਸੈਭਾਈਸਦਾਹਰਿਕੇਗੁਣਗਾਇ॥ਰਹਾਉ॥
har jee-o tayrai man vasai bhaa-ee sadaa har kay gun gaa-ay. rahaa-o.
O’ brother, always sing the glorious praises of the reverend God who resides in your mind. ||Pause||
ਹੇਭਾਈ! ਪ੍ਰਭੂਤੇਰੇਮਨਵਿਚਹੀਵੱਸਦਾਹੈ, ਸਦਾਪ੍ਰਭੂਦੀਸਿਫ਼ਤ-ਸਾਲਾਹਦੇਗੀਤਗਾਇਆਕਰ॥ਰਹਾਉ॥

ہرِ جیِءُ تیرےَ منِ ۄسےَ بھائیِ سدا ہرِ کے گُنھ گاءِ ॥ رہاءُ ॥
ہر جیو ۔ خدا ۔ رہاؤ۔ نامے تے ۔ نام سے ۔ سب ۔
اے بھائی ، ہمیشہ آپ کے ذہن میں بسنے والے قابل احترام خدا کی شان میں گاؤ۔

ਨਾਮੈਤੇਸਭਿਊਪਜੇਭਾਈਨਾਇਵਿਸਰਿਐਮਰਿਜਾਇ॥
naamaitay sabh oopjay bhaa-ee naa-ay visri-ai mar jaa-ay.
O’ brother, people spiritually remain alive by attuning to Naam and upon forsaking Naam, they spiritually die.
ਹੇਭਾਈ! ਨਾਮਵਿਚਜੁੜਕੇਹੀਸਾਰੇਜੀਵਆਤਮਕਜੀਵਨਜੀਊਦੇਹਨ।ਜੇਨਾਮਵਿਸਰਜਾਏ, ਤਾਂਆਤਮਕਮੌਤੇਮਰਜਾਂਦੇਹਨ।

نامےَ تے سبھِ اوُپجے بھائیِ ناءِ ۄِسرِئےَ مرِ جاءِ ॥
سب ۔ سارے ۔اپجے ۔ پیدا ہوئے ہیں۔ نائے وسریئے ۔نام بھول جانے سے ۔ مرجائے ۔ روھانی
اے بھائی لوگ روحانی طور پر نام سے منسلک ہوکرزندہ ہیں اور نام کو ترک کرنے سے روحانی طور پر مردہ رہتے ہیں۔
ਅਗਿਆਨੀਜਗਤੁਅੰਧੁਹੈਭਾਈਸੂਤੇਗਏਮੁਹਾਇ॥੨॥
agi-aanee jagat anDh hai bhaa-ee sootay ga-ay muhaa-ay. ||2||
O’ brother, the ignorant world is blind in the love of Maya; being unaware, they are departing from here after getting robbed of their spiritual wealth. ||2||
ਬੇਸਮਝਜਗਤਮਾਇਆਦੇਮੋਹਵਿਚਅੰਨ੍ਹਾਹੈ।ਮਾਇਆਦੇਮੋਹਵਿਚਸੁੱਤੇਮਨੁੱਖਆਤਮਕਜੀਵਨਦੀਰਾਸਿ-ਪੂੰਜੀਲੁਟਾਕੇਜਾਂਦੇਹਨ॥੨॥

اگِیانیِ جگتُ انّدھُ ہےَ بھائیِ سوُتے گۓ مُہاءِ ॥੨॥
اگیانی ۔ لا علم ۔ جگت۔ دنیا ۔ جہان ۔ علام ۔ اندھ ۔ اندھیرے میں۔ نا وافقفیت ۔ سوتے ۔ غفلت میں۔ مہائے ۔ لٹ گئے
روحانی زندگی کی سمجھ کے بغیر سارا عالم اندھیرے میں ہے ۔ دنیاوی سرمایہ کی محبت میں اور غفلت میں زندگی لٹ رہی ہے

ਗੁਰਮੁਖਿਜਾਗੇਸੇਉਬਰੇਭਾਈਭਵਜਲੁਪਾਰਿਉਤਾਰਿ॥
gurmukh jaagay say ubray bhaa-ee bhavjal paar utaar.
O’ brother, those who follow the Guru’s teachings and wake up from the slumber of Maya, are saved and the Guru ferries them across the world-ocean of vices.
ਹੇਭਾਈ! ਜੇਹੜੇਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਕੇਮਾਇਆਦੇਮੋਹਦੀਨੀਂਦਵਿਚੋਂਜਾਗਪੈਂਦੇਹਨਉਹਸੰਸਾਰ-ਸਮੁੰਦਰਵਿਚਡੁੱਬਣੋਂਬਚਜਾਂਦੇਹਨ, ਗੁਰੂਉਹਨਾਂਨੂੰਸੰਸਾਰ-ਸਮੁੰਦਰਤੋਂਪਾਰਲੰਘਾਦੇਂਦਾਹੈ।

گُرمُکھِ جاگے سے اُبرے بھائیِ بھۄجلُ پارِ اُتارِ ॥
گورمکھ جاگے ۔ جو مرشد کے وسیلے سے بیدار ہوئے ہوشیار ہوئے ۔ سے ابھرے ۔ بچے ۔ بھوجل۔ خوفناک سمندر
جو مرشد کے وسیلے سے بیدار و ہوشیار ہوئے انہیں الہٰی نام سے پیار ہوگیا اور دنیاوی زندگی کے خوفناک سمندر کو پار کیا مراد زندگی کامیاب بنائی ۔
ਜਗਮਹਿਲਾਹਾਹਰਿਨਾਮੁਹੈਭਾਈਹਿਰਦੈਰਖਿਆਉਰਧਾਰਿ॥੩॥
jag meh laahaa har naam hai bhaa-ee hirdai rakhi-aa ur Dhaar. ||3||
O’ brother, the real profit of coming into this world is to meditate on the Name of God, the Guru’s follower Keeps it enshrined within his heart. ||3||
ਹੇਭਾਈ! ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਣਵਾਲਾਆਪਣੇਹਿਰਦੇਵਿਚਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਸਾਂਭਕੇਰੱਖਦਾਹੈ, ਇਹਹਰਿ-ਨਾਮਹੀਜਗਤਵਿਚਲਾਭਹੈ॥੩॥

جگ مہِ لاہا ہرِ نامُ ہےَ بھائیِ ہِردےَ رکھِیا اُر دھارِ ॥੩॥
لاہا۔ منافع ۔ نفع بخشش۔ ہر نام ۔ خدا کا نام
اس عالم میں الہٰی نام ہی نفع بخشش ہے ۔ اسے دل میں بسا ؤ
ਗੁਰਸਰਣਾਈਉਬਰੇਭਾਈਰਾਮਨਾਮਿਲਿਵਲਾਇ॥
gur saranaa-ee ubray bhaa-ee raam naam liv laa-ay.
O’ brother, those who come to the Guru’s refuge and lovingly attune to Naam, are saved from drowning in the world-ocean of vices.
ਹੇਭਾਈ! ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਕੇਪਰਮਾਤਮਾਦੇਨਾਮਵਿਚਸੁਰਤਿਜੋੜਕੇਮਨੁੱਖ (ਸੰਸਾਰ-ਸਮੁੰਦਰਵਿਚਡੁੱਬਣੋਂ) ਬਚਜਾਂਦੇਹਨ।

گُر سرنھائیِ اُبرے بھائیِ رام نامِ لِۄ لاءِ ॥
) گر سرنائی ۔ پناہ مرشد ۔ ناو۔ بیڑا۔ جہاز۔ تلہڑا۔ عارضی بیڑ
جنہوں نے مرشد کی پناہ میں الہٰی نام دل میں بسائیا ۔ وہ زندگی کے خوفناک سمندر میں غرق ہونے سے بچے ۔

ਨਾਨਕਨਾਉਬੇੜਾਨਾਉਤੁਲਹੜਾਭਾਈਜਿਤੁਲਗਿਪਾਰਿਜਨਪਾਇ॥੪॥੯॥
naanak naa-o bayrhaa naa-o tulharhaa bhaa-ee jit lag paar jan paa-ay. ||4||9||
O’ Nanak, Naam is like a ship and a raft, riding which devotees swim across the worldly-ocean of vices. ||4||9||
ਹੇਨਾਨਕ! ਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਹੀਜਹਾਜ਼ਹੈ, ਹਰਿ-ਨਾਮਹੀਤੁਲਹਾਹੈਜਿਸਵਿਚਚੜ੍ਹਕੇਮਨੁੱਖ (ਸੰਸਾਰ-ਸਮੁੰਦਰਤੋਂ) ਪਾਰਲੰਘਜਾਂਦਾਹੈ॥੪॥੯॥

نانک ناءُ بیڑا ناءُ تُلہڑا بھائیِ جِتُ لگِ پارِ جن پاءِ ॥੪॥੯॥
اے نانک۔ الہٰی نام ہی جہاز ہے جس کے ذریعے اس دنیاوی زندگی کے سمندر کو کامیابی سے پار ہو سکتے ہیں۔
ਸੋਰਠਿਮਹਲਾ੩ਘਰੁ੧॥
sorath mehlaa 3 ghar 1.
Raag Sorath, Third Guru, First Beat:
سورٹھِ مہلا ੩ گھرُ ੧॥
ਸਤਿਗੁਰੁਸੁਖਸਾਗਰੁਜਗਅੰਤਰਿਹੋਰਥੈਸੁਖੁਨਾਹੀ॥
satgur sukh saagar jag antar hor thai sukh naahee.
In this world, only the true Guru is like an ocean of peace, and peace cannot be received anywhere else.
ਜਗਤਵਿਚਗੁਰੂਹੀਸੁਖਦਾਸਮੁੰਦਰਹੈ, ਗੁਰੂਤੋਂਬਿਨਾਕਿਸੇਹੋਰਥਾਂਸੁਖਨਹੀਂਮਿਲਦਾ।

ستِگُرُ سُکھ ساگرُ جگ انّترِ ہور تھےَ سُکھُ ناہیِ॥
ستِگُر سکھ ساگر۔ سچا مرشد آرام و آسائش کا سمندر ہے ۔ ۔ جگ ۔ انتر ۔ دنیا میں۔ ہو ر تھے ۔
اے انسان خدمت مرشد سے سکھ ملتا ہے ۔ خدمت مرشد سے سکھ ملتا ہے ورنہ زندگی بیکار چلی جاتی ہے سچا مرشد آرام و آسائش کا سمندر ہے ۔ کسی اور جگہ آرام نہیں ہے
ਹਉਮੈਜਗਤੁਦੁਖਿਰੋਗਿਵਿਆਪਿਆਮਰਿਜਨਮੈਰੋਵੈਧਾਹੀ॥੧॥
ha-umai jagatdukh rog vi-aapi-aa mar janmai rovai Dhaahee. ||1||
The world is afflicted with the painful disease of egotism; it keeps dying to be reborn, it cries out in pain. ||1||
ਜਗਤਹਉਮੈਦੀਦੁੱਖਦਾਈਬੀਮਾਰੀਨੇਗ੍ਰਸਿਆਂਹੋਇਆਹੈ, ਮੁੜਮੁੜਜੰਮਦਾਮਰਦਾਹੈ, ਧਾਹਾਂਮਾਰਮਾਰਕੇਰੋਂਦਾਹੈ॥੧॥

ہئُمےَ جگتُ دُکھِ روگِ ۄِیاپِیا مرِ جنمےَ روۄےَ دھاہیِ॥੧॥
اس دنیا کو خودی کی بیماری لگی ہوئی ہے جس کی وجہ سے تناسخ میں پڑتے ہیں اور آہ وزاری کرتے ہیں
ਪ੍ਰਾਣੀਸਤਿਗੁਰੁਸੇਵਿਸੁਖੁਪਾਇ॥
paraanee satgur sayv sukh paa-ay.
O’ mortal, follow the Guru’s teachings and receive spiritual peace.
ਹੇਬੰਦੇ! ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪਉ, ਤੇ, ਆਤਮਕਆਨੰਦਮਾਣ।
پ٘رانھیِ ستِگُرُ سیۄِ سُکھُ پاءِ ॥
) پرانی ۔ اے انسان ۔
اے انسان خدمت مرشد سے سکھ لتا ہے ۔

ਸਤਿਗੁਰੁਸੇਵਹਿਤਾਸੁਖੁਪਾਵਹਿਨਾਹਿਤਜਾਹਿਗਾਜਨਮੁਗਵਾਇ॥ਰਹਾਉ॥
satgur sayveh taa sukh paavahi naahi ta jaahigaa janam gavaa-ay. rahaa-o.
If you follow the true Guru’s teachings, you would receive peace; otherwise, you would depart from here after wasting away your invaluable life in vain. ||Pause||
ਜੇਤੂੰਗੁਰੂਦੀਦੱਸੀਸੇਵਾਕਰੇਂਗਾ, ਤਾਂਸੁਖਪਾਏਂਗਾ।ਨਹੀਂਤਾਂਆਪਣਾਜੀਵਨਵਿਅਰਥਗੁਜ਼ਾਰਕੇ (ਇਥੋਂ) ਚਲਾਜਾਏਂਗਾਰਹਾਉ॥

ستِگُرُ سیۄہِ تا سُکھُ پاۄہِ ناہِ ت جاہِگا جنمُ گۄاءِ ॥ رہاءُ ॥
اگر آپ سچے گرو کی تعلیمات پر عمل کرتے ہیں تو آپ کو سکون ملتا ہے۔ بصورت دیگر ، آپ اپنی انمول زندگی ضائع کرنے کے بعد یہاں سے چلے جاتے۔
ਤ੍ਰੈਗੁਣਧਾਤੁਬਹੁਕਰਮਕਮਾਵਹਿਹਰਿਰਸਸਾਦੁਨਆਇਆ॥
tarai gunDhaat baho karam kamaaveh har ras saad na aa-i-aa.
People perform many rituals under the influence of three modes of Maya but they do not enjoy the relish of God’s Name.
ਮਨੁੱਖਮਾਇਆਦੇਤਿੰਨਾਂਗੁਣਾਂਦੇਪ੍ਰਭਾਵਵਿਚਮਿਥੇਹੋਏਧਾਰਮਿਕਕਰਮਕਰਦੇਹਨ, ਪਰਉਹਨਾਂਨੂੰਪ੍ਰਭੂਦੇਨਾਮਦਾਸੁਆਦਨਹੀਂਆਉਂਦਾ।

ت٘رےَ گُنھ دھاتُ بہُ کرم کماۄہِ ہرِ رس سادُ ن آئِیا॥
تریگن دھات ۔ تینوں اوصاف الی دوڑ دہوپ ۔ ہر رس۔ الہٰی لطف ۔ ساد۔ مزہ ۔ سندھیا۔
انسا ن تینوں اوصاف کی گرفت میں آکر بہت دوڑ دہوپ جدو جہد کرتا ہے ۔ مگر خدا کا لطف نہیں اُٹھاتا ۔
ਸੰਧਿਆਤਰਪਣੁਕਰਹਿਗਾਇਤ੍ਰੀਬਿਨੁਬੂਝੇਦੁਖੁਪਾਇਆ॥੨॥
sanDhi-aatarpan karahi gaa-itaree bin boojhay dukh paa-i-aa. ||2||
They perform the three daily prayers, make offerings of water to their ancestors and gods and recite Gayatri-mantra, still they suffer without spiritual wisdom. |2|
ਤਿੰਨੇਵੇਲੇਸੰਧਿਆ-ਪਾਠਕਰਦੇਹਨ, ਪਿਤਰਾਂਦੇਵਤਿਆਂਨੂੰਜਲਅਰਪਣਕਰਦੇਹਨ, ਗਾਇਤ੍ਰੀ-ਮੰਤ੍ਰਦਾਪਾਠਕਰਦੇਹਨ, ਪਰਆਤਮਕਜੀਵਨਦੀਸੂਝਤੋਂਬਿਨਾਉਹਨਾਂਨੂੰਦੁੱਖਹੀਮਿਲਦਾਹੈ॥੨॥

سنّدھِیا ترپنھُ کرہِ گائِت٘ریِ بِنُ بوُجھے دُکھُ پائِیا॥੨॥
۔ گائتری ۔ وہ پاک منتر جسے بوقت پرستش پڑھا جاتا ہے ۔ب ن بوجھے ۔ بغیر سمجھنے کے
تینوں وقت سندھایایا پاٹھ کرتے ہیں اپنے آباؤ و اجداد یا بزرگوں یادیوتاوں کو پانی بھینٹ کرتے ہیں تین لائنوں والی گائتری کا جاپ کرتے ہیں مگر روحانی اخلاقی سمجھ کے بغیر عذاب پاتے ہیں
ਸਤਿਗੁਰੁਸੇਵੇਸੋਵਡਭਾਗੀਜਿਸਨੋਆਪਿਮਿਲਾਏ॥
satgur sayvay so vadbhaagee jis no aap milaa-ay.
Fortunate is that person who follows the Guru’s teachings; but the Guru meets only the one whom God Himself unites with the Guru.
ਉਹਮਨੁੱਖਭਾਗਾਂਵਾਲਾਹੈਜੋਗੁਰੂਦੀਦੱਸੀਸੇਵਾਕਰਦਾਹੈ (ਪਰਗੁਰੂਉਸੇਨੂੰਮਿਲਦਾਹੈ) ਜਿਸਨੂੰਪ੍ਰਭੂਆਪਮਿਲਾਏ।

ستِگُرُ سیۄے سو ۄڈبھاگیِ جِس نو آپِ مِلاۓ॥
جو انسان مرشد کے بتائے ہوئے سبق پر عمل کرتا ہے وہ خوش قسمت ہے مگرمرشد اسے ملتا ہے جسے خدا آپ ملاتاہے ۔ خادم خدا الہٰی لطف اُٹھا کر ہمیشہ تسکین حاصل کرتا ہے ۔
ਹਰਿਰਸੁਪੀਜਨਸਦਾਤ੍ਰਿਪਤਾਸੇਵਿਚਹੁਆਪੁਗਵਾਏ॥੩॥
har ras pee jan sadaa tariptaasay vichahu aap gavaa-ay. ||3||
By eradicating their ego and drinking the nectar of God’s Name, the devotees always remain satiated. ||3||
ਮਨੁੱਖਆਪਣੇਅੰਦਰੋਂਆਪਾ-ਭਾਵਦੂਰਕਰਕੇ (ਗੁਰੂਪਾਸੋਂ) ਪ੍ਰਭੂਦੇਨਾਮਦਾਰਸਪੀਕੇਸਦਾਰੱਜੇਰਹਿੰਦੇਹਨ॥੩॥

ہرِ رسُ پیِ جن سدا ت٘رِپتاسے ۄِچہُ آپُ گۄاۓ॥੩॥
۔ خادم خدا الہٰی لطف اُٹھا کر ہمیشہ تسکین حاصل کرتا ہے ۔ اگر اپنے دل سے خودی نکال دے (3)
ਇਹੁਜਗੁਅੰਧਾਸਭੁਅੰਧੁਕਮਾਵੈਬਿਨੁਗੁਰਮਗੁਨਪਾਏ॥
ih jag anDhaa sabh anDh kamaavai bin gur mag na paa-ay.
This world is so ignorant as if it is all blind and does deeds of ignorance, it does not realize that righteous way cannot be obtained without the Guru’s teachings.
ਇਹਜਗਤਮਾਇਆਦੇਮੋਹਵਿਚਅੰਨ੍ਹਾਹੋਇਆਪਿਆਹੈ, ਅੰਨ੍ਹਿਆਂਵਾਲਾਹੀਕੰਮਸਦਾਕਰਦਾਹੈ।ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਣਤੋਂਬਿਨਾ (ਜੀਵਨਦਾਸਹੀ) ਰਸਤਾਨਹੀਂਲੱਭਸਕਦਾ।

اِہُ جگُ انّدھا سبھُ انّدھُ کماۄےَ بِنُ گُر مگُ ن پاۓ॥
یہ دنیا دنیاوی دولت میں اندھی ہوئی ہے اور اندھوں والے کام کرتی ہے ۔ مرشد کے سبق و واعظ کے بغیر روحانی اخلاقی حقیقی زندگی بسر کرنے کی راہیں اور طریقے دریافت نہیں ہو سکتے ۔
ਨਾਨਕਸਤਿਗੁਰੁਮਿਲੈਤਅਖੀਵੇਖੈਘਰੈਅੰਦਰਿਸਚੁਪਾਏ॥੪॥੧੦॥
naanak satgur milai ta akhee vaykhai gharai andar sach paa-ay. ||4||10||
O’ Nanak, when one meets the Guru and follows his teachings, then one sees God with spiritually enlightened eyes and realizes Him in his heart. ||4||10||
ਹੇਨਾਨਕ! ਜੇਇਸਨੂੰਗੁਰੂਮਿਲਪਏ, ਤਾਂ ( ਪ੍ਰਭੂਨੂੰ) ਅੱਖਾਂਨਾਲਵੇਖਲੈਂਦਾਹੈ, ਆਪਣੇਹਿਰਦੇ-ਘਰਵਿਚਹੀਸਦਾਕਾਇਮਰਹਿਣਵਾਲੇਪ੍ਰਭੂਨੂੰਲੱਭਲੈਂਦਾਹੈ॥੪॥੧੦॥

نانک ستِگُرُ مِلےَ ت اکھیِۄیکھےَگھرےَانّدرِسچُپاۓ॥੪॥੧੦॥
اے نانک اگر اسے سچا مرشد مل جائے تو اسے اپنے دل و ذہن میں ہی دیدار خدا ہوجاتا ہے ۔
ਸੋਰਠਿਮਹਲਾ੩॥
sorath mehlaa 3.
Raag Sorath, Third Guru:
سورٹھِ مہلا ੩॥
ਬਿਨੁਸਤਿਗੁਰਸੇਵੇਬਹੁਤਾਦੁਖੁਲਾਗਾਜੁਗਚਾਰੇਭਰਮਾਈ॥
bin satgur sayvay bahutaa dukh laagaa jug chaaray bharmaa-ee.
Without following the true Guru’s teachings, one suffers immensely and always keeps wandering
ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਣਤੋਂਬਿਨਾਮਨੁੱਖਨੂੰਬਹੁਤਦੁੱਖਚੰਬੜਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ, ਮਨੁੱਖਸਦਾਹੀਭਟਕਦਾਫਿਰਦਾਹੈ।

بِنُ ستِگُر سیۄے بہُتا دُکھُ لاگا جُگ چارے بھرمائیِ॥
جگچارے بھرمائی۔ ہر زمانے میں بھٹکتا رہا ۔ دین ۔ بے وقار۔ غریب
سچی گرو کی تعلیمات پر عمل کیے بغیر ، انسان بے حد تکلیف اٹھاتا ہے اور ہمیشہ بھٹکتا رہتا ہے

ਹਮਦੀਨਤੁਮਜੁਗੁਜੁਗੁਦਾਤੇਸਬਦੇਦੇਹਿਬੁਝਾਈ॥੧॥
hamdeen tum jug jug daatay sabday deh bujhaa-ee. ||1||
O’ God, we are helpless and meek and You have been the benefactor age after age; through the Guru’s word bless us with the righteous way to live.||1||
ਹੇਪ੍ਰਭੂ! ਅਸੀਂ (ਜੀਵ, ਤੇਰੇਦਰਦੇ) ਮੰਗਤੇਹਾਂ, ਤੂੰਸਦਾਹੀ (ਸਾਨੂੰ) ਦਾਤਾਂਦੇਣਵਾਲਾਹੈਂ, (ਮੇਹਰਕਰ, ਗੁਰੂਦੇ) ਸ਼ਬਦਵਿਚਜੋੜਕੇਆਤਮਕਜੀਵਨਦੀਸਮਝਬਖ਼ਸ਼॥੧॥

ہم دیِن تُم جُگُ جُگُ داتے سبدے دیہِ بُجھائیِ॥੧॥
اے خدا تو ہر دور زماں میں داتا ہمیں اپنے کلام سبق درس وواعظ سے روحانی اخلاقی زندگی بسر کرنے کا طور طریقہ راستہ سمجھاؤ
ਹਰਿਜੀਉਕ੍ਰਿਪਾਕਰਹੁਤੁਮਪਿਆਰੇ॥
har jee-o kirpaa karahu tum pi-aaray.
O’ reverend God, please bestow mercy on me,
ਹੇਪਿਆਰੇਪ੍ਰਭੂਜੀ! (ਮੇਰੇਉਤੇ) ਮੇਹਰਕਰ,

ہرِ جیِءُ ک٘رِپا کرہُ تُم پِیارے॥
اے خدا براہ کرم مجھ پر رحم کریں ،
ਸਤਿਗੁਰੁਦਾਤਾਮੇਲਿਮਿਲਾਵਹੁਹਰਿਨਾਮੁਦੇਵਹੁਆਧਾਰੇ॥ਰਹਾਉ॥
satgurdaataa mayl milaavhu har naam dayvhu aaDhaaray. rahaa-o.
and unite me to meet the Guru, the bestower of Naam, and through him bless me with Naam, the support of my life. ||Pause||
ਤੇਰੇਨਾਮਦੀਦਾਤਿਦੇਣਵਾਲਾਗੁਰੂਮੈਨੂੰਮਿਲਾ, ਅਤੇ (ਮੇਰੀਜ਼ਿੰਦਗੀਦਾ) ਸਹਾਰਾਆਪਣਾਨਾਮਮੈਨੂੰਦੇਹ॥ਰਹਾਉ॥

ستِگُرُ داتا میلِ مِلاۄہُ ہرِ نامُ دیۄہُ آدھارے ॥ رہاءُ ॥
اور مجھے نام کے داعی گرو ، سے ملنے کے لئے متحد کریں ، اور اس کے ذریعہ مجھے ، میری زندگی کا سہارا ، نام سے نوازے۔
ਮਨਸਾਮਾਰਿਦੁਬਿਧਾਸਹਜਿਸਮਾਣੀਪਾਇਆਨਾਮੁਅਪਾਰਾ॥
mansaa maar dubiDhaa sahj samaanee paa-i-aa naam apaaraa.
One who realizes the Name of the infinite God, eradicates his worldly desires, his double mindedness changes into a state of spiritual equipoise
ਜਿਸਮਨੁੱਖਨੇਬੇਅੰਤਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਹਾਸਲਕਰਲਿਆ ,ਉਸਨੇਵਾਸਨਾਨੂੰਮੁਕਾਕੇਉਸਦੀਮਾਨਸਕਡਾਂਵਾਂ-ਡੋਲਹਾਲਤਆਤਮਕਅਡੋਲਤਾਵਿਚਲੀਨਹੋਜਾਂਦੀਹੈ।

منسا مارِ دُبِدھا سہجِ سمانھیِ پائِیا نامُ اپارا ॥
جو لامحدود خدا کے نام کا احساس کرتا ہے ، اپنی دنیاوی خواہشات کا خاتمہ کرتا ہے ، اس کی دوغلی پن روحانی آسائشوں کی حالت میں بدل جاتی ہے
ਹਰਿਰਸੁਚਾਖਿਮਨੁਨਿਰਮਲੁਹੋਆਕਿਲਬਿਖਕਾਟਣਹਾਰਾ॥੨॥
har ras chaakh man nirmal ho-aa kilbikh kaatanhaaraa. ||2||
Because God’s Name is the destroyer of sins, therefore by tasting the relish of God’s Name, such a person’s mind becomes immaculate. ||2||

ہرِ رسُ چاکھِ منُ نِرملُ ہویا کِلبِکھ کاٹنھہارا ॥੨॥
الہٰی لطف کا مزہ لینے سے دل پاک و پائس ہوجاتا ہے جو گناہوںکو کاٹ دیتا ہے