Urdu-Raw-Page-474

ਦੇਖਹਿ ਕੀਤਾ ਆਪਣਾ ਧਰਿ ਕਚੀ ਪਕੀ ਸਾਰੀਐ ॥
daykheh keetaa aapnaa Dhar kachee pakee saaree-ai.
You behold Your creation like a board game and decide which pieces (mortals) are true (who have achieved their purpose of human life) and which are false.
ਤੂੰਆਪਣੀਰਚਨਾਅਤੇਹਾਰਨਤੇਜਿੱਤਣਵਾਲੀਨਰਦਾਂਨੂੰਧਰਤੀਉਤੇਵੇਖਦਾਹੈ।(ਚੰਗੇਮੰਦੇਜੀਵਾਂਨੂੰਪੈਦਾਕਰਕੇ, ਆਪਣੇਪੈਦਾਕੀਤੇਹੋਇਆਂਦੀਤੂੰਆਪਹੀਸੰਭਾਲਕਰਰਿਹਾਹੈਂ)
دیکھہِکیِتاآپݨادھرِکچیپکیساریِۓَ ॥
آپ اپنی تخلیق کو(لکڑی کے) بورڈ کے کھیل کی طرح دیکھتے ہو اور فیصلہ کرتے ہو کہ کون سے ٹکڑے (بشر) سچ ہیں (جنہوں نے انسانی زندگی کا اپنا مقصد حاصل کیا ہے) اور کون سا باطل ہے۔

ਜੋ ਆਇਆ ਸੋ ਚਲਸੀ ਸਭੁ ਕੋਈ ਆਈ ਵਾਰੀਐ ॥
jo aa-i-aa so chalsee sabh ko-ee aa-ee vaaree-ai.
Whoever has come into this world shall depart; all shall have their turn for departure.
ਜੋਸੰਸਾਰਤੇਜਨਮਲੈਕੇਆਇਆਹੈ, ਉਸਦੀਮੌਤਵੀਅਵੱਸ਼ਹੋਵੇਗੀ।ਵਾਰੀਸਭਨੂੰਆਉਣਵਾਲੀਹੈ।
جۄآئِیاسۄچلسیسبھُکۄئیآئیواریِۓَ ॥
جو بھی اس دنیا میں آیا ہے اس نے چلے جانا ہے ، (بس )سب کی اپنی اپنی باری ہے

ਜਿਸ ਕੇ ਜੀਅ ਪਰਾਣ ਹਹਿ ਕਿਉ ਸਾਹਿਬੁ ਮਨਹੁ ਵਿਸਾਰੀਐ ॥
jis kay jee-a paraan heh ki-o saahib manhu visaaree-ai
He who owns our soul, and our very breath of life – why should we forget that Master-God from our mind?
ਆਪਣੇਦਿਲਵਿਚੋਂਉਸਸੁਆਮੀਨੂੰਕਿਉਂਭੁਲਾਈਏਜੋਸਾਡੀਜਿੰਦੜੀਤੇਜਿੰਦ-ਜਾਨਦਾਮਾਲਕਹੈ?
جِسکےجیءپراݨہہِکِءُصاحِبُمنہُوِساریِۓَ ۔ ॥
وہ جو ہماری روح کا مالک ہے اور ہماری زندگی کے لئے اہم ترین سانسوں کا مالک ہے، ہم ایسے خداوند اور مالک کو اپنے ذہنوں سے کیسے نکال سکتے ہیں

ਆਪਣ ਹਥੀ ਆਪਣਾ ਆਪੇ ਹੀ ਕਾਜੁ ਸਵਾਰੀਐ ॥੨੦॥
aapan hathee aapnaa aapay hee kaaj savaaree-ai. ||20||
We should accomplish our task (of uniting with God) ourselves, by meditating on his Name.
ਆਪਣਾਕੰਮਆਪਹੀਸੁਆਰਨਾਚਾਹੀਦਾਹੈ, ਤੇਮਨੁੱਖਾ-ਜਨਮਹਰੀਦੇਸਿਮਰਨਨਾਲਸਫਲਕਰਨਾਚਾਹੀਦਾਹੈ
آپݨہتھیآپݨاآپےہیکاجُسواریِۓَ ॥ 20 ॥
آئیے اپنے معاملات خود حل کریں(اپنی آخرت کے سامان کا خود انتظام کریں)

ਸਲੋਕੁ ਮਹਲਾ ੨
salok mehlaa 2.
Salok, by Second Guru
سلوک ، گرو دوم

ਏਹ ਕਿਨੇਹੀ ਆਸਕੀ ਦੂਜੈ ਲਗੈ ਜਾਇ ॥
ayh kinayhee aaskee doojai lagai jaa-ay.
What kind of love (for God) is this, when one also loves someone else(other than God)?
ਇਹਕਿਸਕਿਸਮਦੀਪ੍ਰੀਤਹੈ, ਜੋਹੋਰਸਨਾਲਲੱਗਦੀਹੈ?
ایہکِنیہییاشقیدۄُجےَلگےَجاءِ ॥
یہ کیسا پیار ہے کہ انسان شرک میں مبتلا رہے(خدا کے علاوہ کسی اور سے محبت بھی کرے اور عبادت بھی)

ਨਾਨਕ ਆਸਕੁ ਕਾਂਢੀਐ ਸਦ ਹੀ ਰਹੈ ਸਮਾਇ ॥
naanak aasak kaaNdhee-ai sad hee rahai samaa-ay.
O’ Nanak, he alone is considered a true lover (of God), who remains forever absorbed in the love of his beloved (God).
ਹੇਨਾਨਕ, ਕੇਵਲਓਹੀਪਿਆਰਕਰਨਵਾਲਾਆਖਿਆਜਾਂਦਾਹੈ, ਜੋਹਮੇਸ਼ਾਂ, ਵਾਹਿਗੁਰੂਅੰਦਰਲੀਨਰਹਿੰਦਾਹੈ।
نانکیاشقُکانْڈھیِۓَسدہیرہےَسماءِ ॥
اے نانک صرف وہی رب کا سچا عاشق ہے جو ہر وقت رب کی محبت میں ضم رہتا ہے

ਚੰਗੈ ਚੰਗਾ ਕਰਿ ਮੰਨੇ ਮੰਦੈ ਮੰਦਾ ਹੋਇ ॥
changai changa kar mannay mandai mandaa ho-ay.
One who feels happy only when good things happen, and becomes unhappy when things go badly,
ਜੋਕੇਵਲਓਦੋਂਹੀਖੁਸ਼ਹੁੰਦਾਹੈਜਦਉਸਦਾਸਾਈਂਖੁਸ਼ੀਬਖਸ਼ਦਾਹੈਪਰਮੁਸੀਬਤਵਿੱਚਸ਼ੋਕਵਾਨਹੋਜਾਂਦਾਹੈ l
چنّگےَچنّگاکرِمنّنےمنّدےَمنّداہۄءِ ॥
لیکن وہ شخص جو صرف اس وقت اچھا بنتا ہے جب اس کے ساتھ بھلائی کی جائے اور اس وقت برا بن جائے جب اس کے ساتھ برائی ہو

ਆਸਕੁ ਏਹੁ ਨ ਆਖੀਐ ਜਿ ਲੇਖੈ ਵਰਤੈ ਸੋਇ ॥੧॥
aasak ayhu na aakhee-ai je laykhai vartai so-ay. ||1||
such a person cannot be called a true lover (of God), as he is dealing with God in such a business like fashion.
ਉਹਮਨੁੱਖਸੱਚਾਆਸ਼ਕਨਹੀਂਕਿਹਾਜਾਸਕਦਾ, ਕਿਉਂਕਿਉਹਲੇਖੇਗਿਣਗਿਣਕੇਪਿਆਰਦੀਸਾਂਝਬਣਾਂਦਾਹੈ l
یاشقُایہُنآکھیِۓَجِلیکھےَورتےَسۄءِ ॥1॥
ایسے شخص کو رب کا عاشق نہ کہو ، وہ صرف اپنے کھاتے میں تجارت کر رہا ہے

ਮਹਲਾ ੨ ॥
mehlaa 2.
Salok, Second Guru
سلوک گرو دوم

ਸਲਾਮੁ ਜਬਾਬੁ ਦੋਵੈ ਕਰੇ ਮੁੰਢਹੁ ਘੁਥਾ ਜਾਇ ॥
salaam jabaab dovai karay mundhhu ghuthaa jaa-ay.
One who sometimes offers respectful acceptanceof God’s commands that he likes and sometimes rude refusal to commands that he does not like, is fundamentally going astray from the path of always accepting the Will of God.
ਜੋਮਨੁੱਖਆਪਣੇਮਾਲਕਪ੍ਰਭੂਦੇਹੁਕਮਅੱਗੇਕਦੇਤਾਂਸਿਰਨਿਵਾਂਦਾਹੈ, ਅਤੇਕਦੇਉਸਦੇਕੀਤੇਉੱਤੇਇਤਰਾਜ਼ਕਰਦਾਹੈ, ਉਹਮਾਲਕਦੀਰਜ਼ਾਦੇਰਾਹਉੱਤੇਤੁਰਨਤੋਂਉੱਕਾਹੀਖੁੰਝਿਆਜਾਰਿਹਾਹੈ।
سلامُجبابُدۄوےَکرےمُنّڈھہُگھُتھاجاءِ ॥
ایسا شخص جو کبھی اپنے رب کو مودبانہ سلام پیش کرتا ہے اور کبھی اس کے احکامات کا انکار کرتا ہے ، ایسا شخص شروع دن سے ہی غلط ہے۔
(جو کبھی خدا کے ان احکامات کا احترام کرتا ہے جنہیں وہ پسند کرتا ہے اور کبھی کبھی اناحکامات سے انکار کرتا ہے جنہیں وہ پسند نہیں کرتا ہے ، وہ شخص بنیادی طور پر ہمیشہ خدا کی مرضی کو قبول کرنے کے راستے سے بھٹک رہا ہے۔)

ਨਾਨਕ ਦੋਵੈ ਕੂੜੀਆ ਥਾਇ ਨ ਕਾਈ ਪਾਇ ॥੨॥
naanakdovai koorhee-aa thaa-ay na kaa-ee paa-ay. ||2||
O’ Nanak, both these attitudes are false, and are not accepted in God’s court.
ਉਸਦੇਦੋਨੋਂਹੀਕੰਮਝੁਠੇਹਨ।ਰੱਬਦੀਦਰਗਾਹਅੰਦਰਉਹਨੂੰਕੋਈਜਗ੍ਹਾਂਨਹੀਂਮਿਲਦੀ।
نانکدۄوےَکۄُڑیِیاتھاءِنکائیپاءِ ॥2॥
نانک ، اس کے دونوں عمل غلط ہیں۔ خداوند کے دربار میں اسے کوئی جگہ نہیں ملتی۔

ਪਉੜੀ ॥
pa-orhee.
Pauree:21
پوڑی 21

ਜਿਤੁ ਸੇਵਿਐ ਸੁਖੁ ਪਾਈਐ ਸੋ ਸਾਹਿਬੁ ਸਦਾ ਸਮ੍ਹ੍ਹਾਲੀਐ ॥
jit sayvi-ai sukh paa-ee-ai so saahib sadaa samHaalee-ai.
We should always remember that Master (God), remembering whom we always find peace and happiness
ਜਿਸਮਾਲਕਦਾਸਿਮਰਨਕੀਤਿਆਂਸੁਖਮਿਲਦਾਹੈ, ਉਸਮਾਲਕਨੂੰਸਦਾਯਾਦਰੱਖਣਾਚਾਹੀਦਾਹੈ।
جِتُسیوِۓَسُکھُپائیِۓَسۄصاحِبُسداسم٘ہالیِۓَ ॥
اس رب کی خدمت کرتے ہوئے راحت نصیب ہوتی ہے، ہمیشہ اس سچے رب کو یاد کرو اور اس کی بات سنو

ਜਿਤੁ ਕੀਤਾ ਪਾਈਐ ਆਪਣਾ ਸਾ ਘਾਲ ਬੁਰੀ ਕਿਉ ਘਾਲੀਐ ॥
jit keetaa paa-ee-ai aapnaa saa ghaal buree ki-o ghaalee-ai.
When we know that we have to bear the consequences of our own deeds, then why should we do any evil deeds?
ਜਦੋਂਮਨੁੱਖਨੇਆਪਣੇਕੀਤੇਦਾਫਲਆਪਭੋਗਣਾਹੈਤਾਂਫੇਰਕੋਈਮਾੜੀਕਮਾਈਨਹੀਂਕਰਨੀਚਾਹੀਦੀ l
جِتُکیِتاپائیِۓَآپݨاساگھالبُریکِءُگھالیِۓَ ۔ ॥
پھر تم ایسی بد اعمالیاں کیوں کرتے ہو کہ بعد میں تمھیں ان کی سزا بھگتنی پڑے

ਮੰਦਾ ਮੂਲਿ ਨ ਕੀਚਈ ਦੇ ਲੰਮੀ ਨਦਰਿ ਨਿਹਾਲੀਐ ॥
mandaa mool na keech-ee day lammee nadar nihaalee-ai.
We should not do any bad deeds at all; we should consider their consequences with a far sight.
ਮਾੜਾਕੰਮਭੁੱਲਕੇਭੀਨਾਕਰੀਏ, ਡੂੰਘੀ (ਵਿਚਾਰਵਾਲੀ) ਨਜ਼ਰਮਾਰਕੇਤੱਕਲਈਏ
منّدامۄُلِنکیِچئیدےلنّمیندرِنِہالیِۓَ ॥
گناہ کا کوئی بھی کام نہ کرو اور ہمیشہ دوراندیشی سے کام لو(ان گناہوں کے نتائج پر نظر رکھو)

ਜਿਉ ਸਾਹਿਬ ਨਾਲਿ ਨ ਹਾਰੀਐ ਤੇਵੇਹਾ ਪਾਸਾ ਢਾਲੀਐ ॥
ji-o saahib naal na haaree-ai tavayhaa paasaa dhaalee-ai.
In this game of life, we should throw our dice (live the life) in such a way that we are not considered losers before our Master-God (our love for God should never diminish).
ਕੋਈਇਹੋਜਿਹਾਉੱਦਮਕਰਨਾਚਾਹੀਦਾਹੈ, ਜਿਸਕਰਕੇਪ੍ਰਭੂਨਾਲੋਂਪ੍ਰੀਤਨਾਟੁੱਟਜਾਏ।
جِءُصاحِبنالِنہاریِۓَتیویہاپاساڈھالیِۓَ ॥
لہذا اس طرح نرخ پھینک دو(اپنا پتہ اس طرح کھیلو) کہ تم اپنے پروردگار سے محروم نہ ہو۔

ਕਿਛੁ ਲਾਹੇ ਉਪਰਿ ਘਾਲੀਐ ॥੨੧॥
kichh laahay upar ghaalee-ai. ||21||
(In this precious human life), we should invest in those things that bring us profit (do those deeds that will bring us honor in God’s court; remembering God and accepting His will are the only safe investments)
(ਮਨੁੱਖਾ-ਜਨਮਪਾਕੇ) ਕੋਈਨਫ਼ੇਵਾਲੀਘਾਲਕਮਾਈਕਰਨੀਚਾਹੀਦੀਹੈ
کِچھُلاہےاُپرِگھالیِۓَ ॥ 21 ॥
کام وہ کرو جو تمھیں منافع دے سکیں

ਸਲੋਕੁ ਮਹਲਾ ੨
salok mehlaa 2.
Shalok, by the Second Guru:
سلوک، گرو دوم

ਚਾਕਰੁ ਲਗੈ ਚਾਕਰੀ ਨਾਲੇ ਗਾਰਬੁ ਵਾਦੁ ॥
chaakar lagai chaakree naalay gaarab vaad.
If a servant performs service of his master but also arrogantly argues with him,
ਜੋਕੋਈਨੌਕਰਆਪਣੇਮਾਲਕਦੀਨੌਕਰੀਭੀਕਰੇ, ਤੇਨਾਲਆਕੜਦੀਆਂਗੱਲਾਂਭੀਕਰੀਜਾਏ,
چاکرُلگےَچاکرینالےگاربُوادُ ॥
جب کوئی نوکر اس طرح سے خدمت کرے کہ مالک کے ساتھ بدتمیزانہ بحث بھی کرتا رہے

ਗਲਾ ਕਰੇ ਘਣੇਰੀਆ ਖਸਮ ਨ ਪਾਏ ਸਾਦੁ ॥
galaa karay ghanayree-aa khasam na paa-ay saad.
he may talk a lot in ego, but does not earn the pleasure of his master
ਅਤੇਬਹੁਤੀਆਂਗੱਲਾਂਬਣਾਏ,ਉਹਆਪਣੇਮਾਲਕਦੀ ਖ਼ੁਸ਼ੀ ਹਾਸਲ ਨਹੀਂ ਕਰ ਸਕਦਾ।
گلاکرےگھݨیریِیا خصمنپاۓسادُ ॥
وہ جتنی چاہے بات کرے ، لیکن وہ اپنے آقا کو راضی نہیں کرے گا۔

ਆਪੁ ਗਵਾਇ ਸੇਵਾ ਕਰੇ ਤਾ ਕਿਛੁ ਪਾਏ ਮਾਨੁ ॥
aap gavaa-ay sayvaa karay taa kichh paa-ay maan.
When he serves (the master) after shedding his ego, only then he receives some recognition (from the master),
ਮਨੁੱਖਆਪਣਾਆਪਮਿਟਾਕੇਸੇਵਾਕਰੇਤਾਂਹੀਉਸਨੂੰਮਾਲਕਦੇਦਰਤੋਂਕੁਝਆਦਰਮਿਲਦਾਹੈ,
آپُگواءِسیواکرےتاکِچھُپاۓمانُ ॥
لیکن اگر وہ اپنی انا پرستی (خودی)کو ہٹا کر اپنے مالک کی خدمت کرتا ہے تو مالک کی نظر میں عزت پائے گا

ਨਾਨਕ ਜਿਸ ਨੋ ਲਗਾ ਤਿਸੁ ਮਿਲੈ ਲਗਾ ਸੋ ਪਰਵਾਨੁ ॥੧॥
naanak jis no lagaa tis milai lagaa so parvaan. ||1||
O’ Nanak, similarly, if a devotee, (who is humbly engaged in the service of remembering God with love and devotion), becomes united with God, then his service is approved in God’s presence.
ਨਾਨਕ, ਜੇਕਰ ਇਨਸਾਨ ਉਸ ਨੂੰ ਮਿਲ ਪਵੇ ਜਿਸ ਨਾਲ ਉਹ ਜੁੜਿਆ ਹੈ, ਤਾਂ ਉਸ ਦੀ ਲਗਨ ਕਬੂਲ ਪੈ ਜਾਂਦੀ ਹੈ।
نانکجِسنۄلگاتِسُمِلےَلگاسۄپروانُ ॥1॥
اے نانک، اگر وہ اسی میں ضم ہوتا ہے کہ جس کے ساتھ منسلک ہے تو اسکا یہ جڑنا قابل قبول ہے۔
( اگر کوئی عقیدت مند ، (جو عاجزی کے ساتھ محبت اور عقیدت کے ساتھ خدا کو یاد کرنے کی خدمت میں مصروف ہے) ، خدا کے ساتھ متحد ہوجاتا ہے ، تو خدا کی بارگاہ میں اس کی خدمت کی منظوری مل جاتی ہے )

ਮਹਲਾ ੨ ॥
mehlaa 2.
Salok, by the Second Guru:
سلوک ، گرو دوم

ਜੋ ਜੀਇ ਹੋਇ ਸੁ ਉਗਵੈ ਮੁਹ ਕਾ ਕਹਿਆ ਵਾਉ ॥
jo jee-ay ho-ay so ugvai muh kaa kahi-aa vaa-o.
Whatever is in the mind ultimately comes out, after that, spoken words become useless like blowing air (any evil thoughts about someone ultimately come out and negate whatever sweet words we may speak about him)
ਜਿਹੜਾ ਕੁਛ ਚਿੱਤ ਵਿੱਚ ਹੁੰਦਾ ਹੈ, ਉਹ ਪ੍ਰਗਟ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ। ਕੇਵਲ ਮੂੰਹ-ਜ਼ਬਾਨੀ ਦੀਆਂ ਗੱਲਾਂ ਵਿਅਰਥ ਹਨ।
جۄجیِءِہۄءِسُاُگوےَمُہکاکہِیاواءُ ॥
جو ذہن میں ہوتا ہے سامنے وہی آتا ہے ۔اپنی طرف سے ادا کئے گئے الفاظ ہوا کی مانند ہوتے ہیں۔
[ کسی کے بارے میں کوئی بری سوچ بالآخر سامنے آجاتی ہے اور اس کے بارے میں جو بھی میٹھے الفاظ ہم بول سکتے ہیں اس کی نفی کرتے ہیں۔حقیقت سامنے آ ہی جاتی ہے چاہے لفظوں کی مدد سے اسے چھپانے کی جتنی کوشش کر لی جائے]

ਬੀਜੇ ਬਿਖੁ ਮੰਗੈ ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਵੇਖਹੁ ਏਹੁ ਨਿਆਉ ॥੨॥
beejay bikh mangai amrit vaykhhu ayhu ni-aa-o. ||2||
(When we have bad intentions inside, but expect good results), Guru ji says: look at what kind of justice one expects, he sows poison, but asks for nectar in return?
ਪ੍ਰਾਣੀ ਜ਼ਹਿਰ ਬੀਜਦਾ ਹੈ ਅਤੇ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਲੋੜਦਾ ਹੈ। ਦੇਖੋ। ਇਹ ਕਿਸ ਕਿਸਮ ਦਾ ਇਨਸਾਫ ਹੈ।
بیِجےبِکھُمنّگےَانّم٘رِتُویکھہُایہُنِیاءُ ॥2॥
یہ کہاں کا انصاف ہے کہ کوئی ذہر کا بیج بوئے اور امرت کے اگائے جانے کا مطالبہ کرے؟

ਮਹਲਾ ੨ ॥
mehlaa 2.
Salok, by the Second Guru:
سلوک ،گرو دوم

ਨਾਲਿ ਇਆਣੇ ਦੋਸਤੀ ਕਦੇ ਨ ਆਵੈ ਰਾਸਿ ॥
naal i-aanay dostee kaday na aavai raas.
Friendship with a person with immature (ignorant) mind never works out.
ਮੂਰਖ ਦੇ ਸਾਥ ਮਿੱਤ੍ਰਤਾ ਕਦਾਚਿਤ ਠੀਕ ਨਹੀਂ ਬਹਿੰਦੀ।
نالِاِیاݨےدۄستیکدےنآوےَراسِ ॥
احمق کی دوستی کبھی ثمر آور نہیں ہوتی

ਜੇਹਾ ਜਾਣੈ ਤੇਹੋ ਵਰਤੈ ਵੇਖਹੁ ਕੋ ਨਿਰਜਾਸਿ ॥
jayhaa jaanai tayho vartai vaykhhu ko nirjaas.
Because, whatever that (immature) person knows, he acts according to that immature intellect;anyone can check this himself. (Similarly, if we follow the dictates of our foolish mind, we would not gain anything).
ਜੇਹੋ ਜੇਹਾ ਉਹ ਜਾਣਦਾ ਹੈ, ਉਹੋ ਜੇਹਾ ਹੀ ਉਹ ਕਰਦਾ ਹੈ। ਕੋਈ ਜਣਾ ਇਸ ਦਾ ਨਿਰਣਯ ਕਰਕੇ ਦੇਖ ਲਵੇ।
جیہاجاݨےَتیہۄورتےَویکھہُکۄنِرجاسِ ॥
وہ ویسا کچھ ہی کرتا ہے جتنا کچھ اسے علم ہوتا ہے۔وہ اس پر قائم رہتا ہے ،دیکھو ایسا ہی ہے۔
[کیونکہ جو کچھ بھی وہ (نادان) جانتا ہےوہ اپنی اس نادان عقل کے مطابقکرتا ہے ، کوئی بھی خود اس کی جانچ کرسکتا ہے۔ (اسی طرح ، اگر ہم اپنے بے وقوف ذہن کے حکم پر عمل کریں گے تو ہمیں بھی کچھ حاصل نہیں ہوگا)]۔

ਵਸਤੂ ਅੰਦਰਿ ਵਸਤੁ ਸਮਾਵੈ ਦੂਜੀ ਹੋਵੈ ਪਾਸਿ ॥
vastoo andar vasat samaavai doojee hovai paas.
One thing can be put in a vessel only if the thing already there is first put aside (similarly, one can enshrine God in one’s heart only if one first takes out the ego from the mind)
ਕਿਸੇ ਇਕ ਚੀਜ਼ ਵਿਚ ਕੋਈ ਹੋਰ ਚੀਜ਼ ਤਾਂ ਹੀ ਪੈ ਸਕਦੀ ਹੈ, ਜੇ ਉਸ ਵਿਚੋਂ ਪਹਿਲੀ ਪਈ ਹੋਈ ਚੀਜ਼ ਕੱਢ ਲਈ ਜਾਏ; (ਇਸੇ ਤਰ੍ਹਾਂ ਇਸ ਮਨ ਨੂੰ ਪ੍ਰਭੂ ਵਲ ਜੋੜਨ ਲਈ ਇਹ ਜ਼ਰੂਰੀ ਹੈ ਕਿ ਇਸ ਦਾ ਪਹਿਲਾ ਸੁਭਾਉ ਤਬਦੀਲ ਕੀਤਾ ਜਾਏ)।
وستۄُانّدرِوستُسماوےَدۄُجیہۄوےَپاسِ ॥
کسی بھی برتن میں ایک وقت میں صرف ایک چیز ہی سما سکتی ہے، دوسری کو اپنے پاس نکال رکھنا پڑتا ہے۔
[ایک برتن میں ایک چیز صرف اسی صورت میں رکھی جاسکتی ہے جب پہلے سے موجود چیز کو پہلے ایک طرف رکھ دیا جاتا ہے ۔اسی طرح ، ایک شخص اپنے دل میں خدا کو داخل کر سکتا ہے صرف اس صورت میں جب کوئی ذہن سے انا نکال لے]

ਸਾਹਿਬ ਸੇਤੀ ਹੁਕਮੁ ਨ ਚਲੈ ਕਹੀ ਬਣੈ ਅਰਦਾਸਿ ॥
saahib saytee hukam na chalai kahee banai ardaas.
With our Master (God), command does not work; it is (humble) prayer, which works with Him.
ਸੁਆਮੀ ਨਾਲ ਫੁਰਮਾਨ ਕਰਨਾ ਕਾਮਯਾਬ ਨਹੀਂ ਹੁੰਦਾ। ਉਸ ਅੱਗੇ ਪ੍ਰਾਰਥਨਾ ਕਰਨੀ ਬਣਦੀ ਹੈ।
صاحِبسیتیحُکمُنچلےَکہیبݨےَعرداسِ ॥
کوئ بھی اس مالک خدا کو احکام جاری نہیں کر سکتا ماسوائے اس کے کہ اس کے سامنے عاجزی سے دعا کرے

ਕੂੜਿ ਕਮਾਣੈ ਕੂੜੋ ਹੋਵੈ ਨਾਨਕ ਸਿਫਤਿ ਵਿਗਾਸਿ ॥੩॥
koorh kamaanai koorho hovai naanak sifat vigaas. ||3||
O’ Nanak, the result of practicing falsehood is falsehood; it is only the praise of God, which brings true delight.
ਹੇਨਾਨਕ! ਧੋਖੇਦਾਕੰਮਕੀਤਿਆਂਧੋਖਾਹੀਹੁੰਦਾਹੈ, ਪ੍ਰਭੂਦੀਸਿਫ਼ਤਿ-ਸਾਲਾਹਕੀਤਿਆਂਹੀਮਨਖਿੜਾਉਵਿਚਆਉਂਦਾਹੈ
کۄُڑِکماݨےَکۄُڑۄہۄوےَنانکصِفتِوِگاسِ ॥3॥
جھوٹ بولنے سے باطل ہی حاصل ہو گا۔اے نانک خداوند کی حمد و ثنا کے ذریعے ہی ایک انسان پھول کی طرح کھل اٹھتا ہے۔

ਮਹਲਾ ੨ ॥
mehlaa 2.
Salok, by the Second Guru:
سلوک ، گرو دوم

ਨਾਲਿ ਇਆਣੇ ਦੋਸਤੀ ਵਡਾਰੂ ਸਿਉ ਨੇਹੁ ॥
naal i-aanay dostee vadaaroo si-o nayhu.
Friendship with an ignorant, or love with a person of higher status than us,
ਅੰਞਾਣਨਾਲਮਿੱਤਰਤਾ, ਜਾਂਆਪਣੇਨਾਲੋਂਵੱਡੇਨਾਲਪਿਆਰ-
نالِاِیاݨےدۄستیوڈارۄُسِءُنیہُ ॥
کسی احمق کی دوستی اور مغرور کی محبت

ਪਾਣੀ ਅੰਦਰਿ ਲੀਕ ਜਿਉ ਤਿਸ ਦਾ ਥਾਉ ਨ ਥੇਹੁ ॥੪॥
paanee andar leek ji-o tis daa thaa-o na thayhu. ||4||
(will not last long), like a line drawn in water of which there is neither any trace nor any mark left.
ਇਹਇਉਂਹਨਜਿਵੇਂਪਾਣੀਵਿਚਲੀਕਹੈ, ਉਸਲੀਕਦਾਕੋਈਨਿਸ਼ਾਨਨਹੀਂਰਹਿੰਦਾ
پاݨیانّدرِلیِکجِءُتِسداتھاءُنتھیہُ ॥4॥
پانی پر کھینچی گئی لکیروں کی طرح ہیں جن کا کوئی نشان یا علامت نہیں ہوتی۔

ਮਹਲਾ ੨ ॥
mehlaa 2.
Salok, by the Second Guru:
سلوک ، گرو دوم

ਹੋਇ ਇਆਣਾ ਕਰੇ ਕੰਮੁ ਆਣਿ ਨ ਸਕੈ ਰਾਸਿ ॥
ho-ay i-aanaa karay kamm aan na sakai raas.
If an immature (ignorant) person does any task, he will not be able to bring it to a successful conclusion,
ਜੇਕੋਈਅੰਞਾਣਹੋਵੇਤੇਉਹਕੋਈਕੰਮਕਰੇ, ਉਹਕੰਮਨੂੰਸਿਰੇਨਹੀਂਚਾੜ੍ਹਸਕਦਾ;
ہۄءِاِیاݨاکرےکنّمُآݨِنسکےَراسِ ॥
اگر کوئی کام کسی احمق سے کروایا جاتا ہے تو وہ کام ٹھیک نہیں ہوتا۔
[احمق سے کروایا گیا کام حتمی نتیجہ نہیں دے سکتا]

ਜੇ ਇਕ ਅਧ ਚੰਗੀ ਕਰੇ ਦੂਜੀ ਭੀ ਵੇਰਾਸਿ ॥੫॥
jay ik aDh changee karay doojee bhee vayraas. ||5||
Because, even if he does one small thing right, he would mess up the rest.
ਜੇਭਲਾਉਹਕਦੇਕੋਈਮਾੜਾ-ਮੋਟਾਇਕਕੰਮਕਰਭੀਲਵੇ, ਤਾਂਭੀਦੂਜੇਕੰਮਨੂੰਵਿਗਾੜਦਏਗਾ l
جےاِکادھچنّگیکرےدۄُجیبھیویراسِ ॥5॥
حتٰی کہ اگر وہ کسی ایک کام کو ٹھیک کر بھی لے تو اگلی دفعہ وہ غلطی کر ہی بیٹھے گا

ਪਉੜੀ ॥
Pa-orhee. 22
Pauree:
پوڑی 22

ਚਾਕਰੁ ਲਗੈ ਚਾਕਰੀ ਜੇ ਚਲੈ ਖਸਮੈ ਭਾਇ ॥
chaakar lagai chaakree jay chalai khasmai bhaa-ay.
Only that servant is a true servant (devotee) who, while engaged in the service of the Master (God), works according to the will of the Master.
ਜੇਕਰਸੇਵਾਅੰਦਰਜੁੱਟਿਆਹੋਇਆਸੇਵਕਆਪਣੇਮਾਲਕਦੀਰਜਾਅਨੁਸਾਰਟੁਰੇ,
چاکرُلگےَچاکریجےچلےَخصمےَبھاءِ ॥
مالک کی خدمت کرنے والا نوکر اپنے آقا کی مرضی کے تابع ہوتا ہے[ وہ وہی کام کرتا ہے جو اسکا مالک پسند کرتا ہے

ਹੁਰਮਤਿ ਤਿਸ ਨੋ ਅਗਲੀ ਓਹੁ ਵਜਹੁ ਭਿ ਦੂਣਾ ਖਾਇ ॥
hurmattis no aglee oh vajahu bhe doonaa khaa-ay.
Such a person enjoys great respect and obtains double wages (from the Master)
ਤਾਂ ਉਸ ਦੀ ਇੱਜ਼ਤ ਆਬਰੂ ਵਧੇਰੇ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ ਅਤੇ ਉਸ ਨੂੰ ਮਜ਼ਦੂਰੀ ਭੀ ਦੁਗਣੀ ਮਿਲਦੀ ਹੈ।
حُرمتِتِسنۄاگلیاۄہُوجہُبھِدۄُݨاکھاءِ ॥
اس طرح کرنے سے اسکی عزت بڑھتی ہے اور اس کی اجرت دوگنا ہو جاتی ہے

ਖਸਮੈ ਕਰੇ ਬਰਾਬਰੀ ਫਿਰਿ ਗੈਰਤਿ ਅੰਦਰਿ ਪਾਇ ॥
khasmai karay baraabaree fir gairat andar paa-ay.
(On the other hand, if a servant indulges in insubordination, and) claims to be equal to his master, he earns his master’s displeasure.
ਜੇਕਰ ਉਹ ਆਪਣੇ ਮਾਲਕ ਦੀ ਬਰਾਬਰੀ ਕਰਦਾ ਹੈ, ਤਦ ਉਹ ਉਸ ਦੀ ਨਾਰਾਜਗੀ ਸਹੇੜ ਲੈਂਦਾ ਹੈ।
خصمےَکرےبرابریپھِرِغیَرتِانّدرِپاءِ ॥
لیکن اگر وہ خود کو اپنے مالک کے ہم پلہ (برابر) سمجھے گا تا اس طرح اس کا مالک اس سے راضی یا خوش نہ ہو گا

ਵਜਹੁ ਗਵਾਏ ਅਗਲਾ ਮੁਹੇ ਮੁਹਿ ਪਾਣਾ ਖਾਇ ॥
vajahu gavaa-ay aglaa muhay muhi paanaa khaa-ay.
He loses even his previous wages, and (hears taunts from others, as if) receiving shoe beatings from every one.
ਆਪਣੀ ਪਹਿਲੀ ਤਨਖ਼ਾਹ ਭੀ ਗਵਾ ਬੈਠਦਾ ਹੈ ਤੇ ਸਦਾ ਮੂੰਹ ਤੇ ਜੁੱਤੀਆਂ ਖਾਂਦਾ ਹੈ। (ਸ਼ਰਮਿੰਦਗੀ ਹੀ ਉਠਾਂਦਾ ਹੈ)
وجہُگواۓاگلامُہےمُہِپاݨاکھاءِ ॥
وہ اس طرح اپنی ساری تنخواہ کھو بیٹھتا ہے اور اس کے منہ پر جوتے مارے جاتے ہیں

ਜਿਸ ਦਾ ਦਿਤਾ ਖਾਵਣਾ ਤਿਸੁ ਕਹੀਐ ਸਾਬਾਸਿ ॥
jisdaa ditaa khaavnaa tis kahee-ai saabaas.
Therefore, we should always thank and applaud God on whose sustenance we survive.
ਜਿਸਮਾਲਕਦਾਦਿੱਤਾਖਾਈਏ, ਉਸਦੀਸਦਾਵਡਿਆਈਕਰਨੀਚਾਹੀਦੀਹੈ;
جِسدادِتاکھاوݨاتِسُکہیِۓَساباسِ ॥
آیئے سب مل کر اس کا شکریہ ادا کریں جس سے روزی لے کر ہم سب کھا رہے ہیں

ਨਾਨਕ ਹੁਕਮੁ ਨ ਚਲਈ ਨਾਲਿ ਖਸਮ ਚਲੈ ਅਰਦਾਸਿ ॥੨੨॥
naanak hukam na chal-ee naal khasam chalai ardaas. ||22||
O’ Nanak, it is not the command which works with Him; it is humble prayer that works with the Master (God).
Finally O’ Nanak, it is not command, which works with Him, it is humble prayer which works with the Master
ਹੇਨਾਨਕ! ਮਾਲਕਉੱਤੇਹੁਕਮਨਹੀਂਕੀਤਾਜਾਸਕਦਾ, ਉਸਦੇਅੱਗੇਅਰਜ਼ਕਰਨੀਹੀਫਬਦੀਹੈ l
نانکحُکمُنچلئی نالِخصمچلےَعرداسِ ॥ 22 ॥
اے نانک ، کوئی بھی خدا کو حکم جاری نہیں کرسکتا ، اس کے آگے صرف دعا کی جاسکتی ہے

ਸਲੋਕੁ ਮਹਲਾ ੨
salok mehlaa 2.
Shalok, by the Second Guru:
سلوک ، گرو دوم

ਏਹਕਿਨੇਹੀ ਦਾਤਿ ਆਪਸ ਤੇ ਜੋ ਪਾਈਐ ॥
ayh kinayhee daat aapas tay jo paa-ee-ai.
What kind of a God’s grace is that which we claim that we obtained by our own effort?
ਇਹਕਿਹੜੀਕਿਸਮਦੀਬਖਸ਼ੀਸ਼ਹੈ, ਜਿਹੜੀਅਸੀਂਖੁਦਆਪਣੇਉੱਦਮਨਾਲਲਈਹੈ ?
ایہکِنیہیداتِآپستےجۄپائیِۓَ ॥
کیا دنیا میں کئی ایسا تحفہ ہے جو انسان کو [محض] اس کے خواہش کرنے پر دے دیا گیا ہو۔
[ہم ہرگز یہ دعوٰی نہیں کر سکتے کہ ہم نے خدا کا یہ کرم اپنی محنت سے حاصل کیا ہے]

ਨਾਨਕ ਸਾ ਕਰਮਾਤਿ ਸਾਹਿਬ ਤੁਠੈ ਜੋ ਮਿਲੈ ॥੧॥
naanak saa karmaat saahib tuthai jo milai. ||1||
O Nanak, the real grace is that which God, our Master, bestows upon us when he becomes pleased.
ਹੇਨਾਨਕ! ਬਖ਼ਸ਼ਸ਼ਉਹੀਹੈਜੋਮਾਲਕਦੇਤ੍ਰੁੱਠਿਆਂਮਿਲੇ
نانکساکرماتِ صاحِبتُٹھےَجۄمِلےَ ॥1॥
اے نانک ہمارے لئے خدا کی طرف سے عطا ہونے والا سب سے بڑا تحفہ یہ ہے کہ خداوند ہم پر پوری طرح راضی ہو جائے