Urdu-Raw-Page-473

ਪਉੜੀ ॥
pa-orhee.
Pauree:18
پوڑی 18

ਸਤਿਗੁਰੁ ਵਡਾ ਕਰਿ ਸਾਲਾਹੀਐ ਜਿਸੁ ਵਿਚਿ ਵਡੀਆ ਵਡਿਆਈਆ ॥
satgur vadaa kar salaahee-ai jis vich vadee-aa vadi-aa-ee-aa.
We should praise the True Guru considering him as the greatest; within whom are the greatest virtues.
ਸਤਿਗੁਰੂਦੇਗੁਣਗਾਉਣੇਚਾਹੀਦੇਹਨ, ਗੁਰੂਬਹੁਤਵੱਡਾਹੈ, ਕਿਉਂਕਿਗੁਰੂਵਿਚਵੱਡੇਗੁਣਹਨ।
ستِگُرُوڈاکرِسالاحیِۓَجِسُوِچِوڈیِیاوڈِیائیِیا ॥
سچے عظیم گرو کی تعریف کرو۔ اسی(کی تعریفٰ) میں ہی سب سے بڑی عظمت ہے۔

ਸਹਿ ਮੇਲੇ ਤਾ ਨਦਰੀ ਆਈਆ ॥
seh maylay taa nadree aa-ee-aa.
We see these virtues in the Guru when God unites us with him.
ਜਿਨ੍ਹਾਂਮਨੁੱਖਾਂਨੂੰਪ੍ਰਭੂਨੇਗੁਰੂਨਾਲਮਿਲਾਇਆਹੈ, ਉਹਨਾਂਨੂੰਉਹਗੁਣਅੱਖੀਂਦਿੱਸਦੇਹਨ,
سہِمیلےتاندریآئیِیا ॥
جب خداوند گرو سے ہماری ملاقات کا انتظام فرما دیتا ہے(حکم دیتا ہے) تو ہمیں گرو مل جاتا ہے(گرو سے ہماری ملاقات ہو جاتی ہے)

ਜਾ ਤਿਸੁ ਭਾਣਾ ਤਾ ਮਨਿ ਵਸਾਈਆ ॥
jaa tis bhaanaa taa man vasaa-ee-aa.
When it pleases Him, these virtues come to dwell in our minds.
ਅਤੇਜੇਪ੍ਰਭੂਨੂੰਭਾਵੇਤਾਂਉਹਨਾਂਦੇਮਨਵਿਚਭੀਗੁਣਵੱਸਪੈਂਦੇਹਨ।
جاتِسُبھاݨاتامنِوسائیِیا ॥
جب اسے پسند ہوتا ہے(اس کی مرضی ہوتی ہے) اسے ہمارے ذہنوں میں آباد فرما دیتا ہے

ਕਰਿ ਹੁਕਮੁ ਮਸਤਕਿ ਹਥੁ ਧਰਿ ਵਿਚਹੁ ਮਾਰਿ ਕਢੀਆ ਬੁਰਿਆਈਆ ॥
kar hukam mastak hath Dhar vichahu maar kadhee-aa buri-aa-ee-aa.
By His Will, the Guru becomes merciful and removes all vices from our mind.
ਗੁਰੂਆਪਣੇਅਸਰਦੁਆਰਾਬਦੀਆਂਨੂੰਉਸਦੇਅੰਦਰੋਂਕੱਢਦਿੰਦਾਹੈ।ਜਦਪ੍ਰਭੂਪਰਸੰਨਹੋਪਏ, ਤਾਂਮਾਨੋ, ਸਾਰੇਪਦਾਰਥਮਿਲਪੈਂਦੇਹਨ l
سہِتُٹھےَنءُنِدھِپائیِیا ॥ 18 ॥
جب خدا مکمل طور پر راضی ہو جاتا ہے تو نو کے نو خزانے مل جاتے ہیں(گویا انسان روحانی طور پر اتنا امیر ہو جاتا ہے)

ਸਲੋਕੁਮਃ੧
vb
salok mehlaa 1.
Salok, First Guru:
سلوک ، پہلا گرو

ਪਹਿਲਾ ਸੁਚਾ ਆਪਿ ਹੋਇ ਸੁਚੈ ਬੈਠਾ ਆਇ ॥
pahilaa suchaa aap ho-ay suchai baithaa aa-ay.
First of all, (after thoroughly bathing and washing his body) and thus becoming “pure”, (a Brahmin) comes and sits down in the “purified” (kitchen of his host).
ਸਭਤੋਂਪਹਿਲਾਂ (ਬ੍ਰਾਹਮਣਨ੍ਹਾਧੋਕੇਤੇ) ਸੁੱਚਾਹੋਕੇਸੁੱਚੇਚੌਕੇਉੱਤੇਆਬੈਠਦਾਹੈ,
پہِلاسُچاآپِہۄءِسُچےَبیَٹھاآءِ ॥
اپنے آپ کو پاک کرنے کے بعد برہمن آتا ہے اور اس کے پاکیزہ احاطے(چار دیواری) میں بیٹھ جاتا ہے

ਸੁਚੇ ਅਗੈ ਰਖਿਓਨੁ ਕੋਇ ਨ ਭਿਟਿਓ ਜਾਇ ॥
suchay agai rakhi-on ko-ay na bhiti-o jaa-ay.
The “pure meal”, which no one else has touched before, is placed before him.
ਭੋਜਨ, ਜਿਸਨੂੰਕਿਸੇਨੇਨਹੀਂਛੂਹਿਆਉਸਦੇਮੂਹਰੇਰੱਖੇਜਾਂਦੇਹਨ।
سُچےاگےَرکھِئۄنُکۄءِنبھِٹِئۄجاءِ ॥
وہاں پر خالص کھانے کی اشیاء جسے کسی نے چھوا تک نہیں ہوتا ، اس کے سامنے پیش کی جاتی ہیں۔

ਸੁਚਾ ਹੋਇ ਕੈ ਜੇਵਿਆ ਲਗਾ ਪੜਣਿ ਸਲੋਕੁ ॥
suchaa ho-ay kai jayvi-aa lagaa parhan salok.
Being “purified”, he eats this food, and begins to read some sacred mantras.
ਬ੍ਰਾਹਮਣਸੁੱਚਾਹੋਕੇਉਸਸੁੱਚੇਭੋਜਨਨੂੰਖਾਂਦਾਹੈ, ਤੇਖਾਕੇਸਲੋਕਪੜ੍ਹਨਲੱਗਪੈਂਦਾਹੈ;
سُچاہۄءِکےَجیوِیالگاپڑݨِسلۄکُ ॥
پاک ہونے کی بنا پر وہ کھانا کھانے لگ جاتا ہے اور پھر رب کی مقدس آیات(شکرانے کے طور پر)تلاوت کرنے لگتا ہے

ਕੁਹਥੀ ਜਾਈ ਸਟਿਆ ਕਿਸੁ ਏਹੁ ਲਗਾ ਦੋਖੁ ॥
kuhthee jaa-ee sati-aa kis ayhu lagaa dokh.
This “pure” food is thrown into a filthy place (stomach), so who would bear the blame for polluting such a pure meal?
ਇਸਪਵਿੱਤਰਭੋਜਨਨੂੰਗੰਦੇਥਾਂ (ਢਿੱਡਵਿਚ) ਪਾਲੈਂਦਾਹੈ।ਉਸਪਵਿੱਤਰਭੋਜਨਨੂੰਗੰਦੇਥਾਂਸੁੱਟਣਦਾਦੋਸ਼ਕਿਸਤੇਆਇਆ?
کُہتھیجائیسٹِیاکِسُایہُلگادۄکھُ ۔ ॥
اس “خالص” کھانے کو ایک گندی جگہ (پیٹ) میں پھینک دیا جاتا ہے ، لہذا اس طرح کے خالص کھانے کو آلودہ کرنے کا الزام کون اٹھائے گا؟

ਅੰਨੁ ਦੇਵਤਾ ਪਾਣੀ ਦੇਵਤਾ ਬੈਸੰਤਰੁ ਦੇਵਤਾ ਲੂਣੁ ਪੰਜਵਾ ਪਾਇਆ ਘਿਰਤੁ ॥ ਤਾ ਹੋਆ ਪਾਕੁ ਪਵਿਤੁ ॥
ann dayvtaa paanee dayvtaa baisantar dayvtaa loon panjvaa paa-i-aa ghirat. taa ho-aa paak pavit.
(According to Brahmin’s own belief), the grain is sacred, the water is sacred; the fire and salt are sacred; when the fifth sacred thing, ghee (clarified butter) is added, then the “pure and sanctified” food is considered ready to eat.
ਅੰਨ, ਪਾਣੀ, ਅੱਗਤੇਲੂਣ-ਚਾਰੇਹੀਦੇਵਤਾਹਨ (ਪਵਿੱਤਰਪਦਾਰਥਹਨ), ਪੰਜਵਾਂਘਿਉਭੀਪਵਿੱਤਰਹੈ, ਜੋਇਹਨਾਂਚੌਹਾਂਵਿਚਪਾਈਦਾਹੈ।ਤਾਂ (ਇਹਨਾਂਪੰਜਾਂਨੂੰਰਲਾਇਆਂ) ਬੜਾਪਵਿੱਤਰਭੋਜਨਤਿਆਰਹੁੰਦਾਹੈ।
انّنُدیوتاپاݨیدیوتابیَسنّترُدیوتالۄُݨُپنّجواپائِیاگھِرتُ ॥ تاہۄیاپاکُپوِتُ ॥
مکئی مقدس ہے ، پانی مقدس ہے۔ آگ اور نمک بھی مقدس ہیں۔ جب پانچویں چیز ، گھی کو بھی شامل کرلیا جائے ، تب کھانا پاک و پاکیزہ ہوجاتا ہے۔

ਪਾਪੀ ਸਿਉ ਤਨੁ ਗਡਿਆ ਥੁਕਾ ਪਈਆ ਤਿਤੁ ॥
paapee si-o tan gadi-aa thukaa pa-ee-aa tit.
when this “pure” food comes in contact with the sinful human body, the pure food becomes so impure (human waste) that it stinks and is spat upon.
ਪਰਇਸਪਵਿੱਤਰਭੋਜਨਨੂੰਪਾਪੀਮਨੁੱਖਨਾਲਸੰਗਤਹੁੰਦੀਹੈ, ਜਿਸਕਰਕੇਉਸਉੱਤੇਥੁੱਕਾਂਪੈਂਦੀਆਂਹਨ।
پاپیسِءُتنُگڈِیاتھُکاپئیِیاتِتُ ॥
لیکن یہی کھانا جب ایک گناہگار شخص کے پیٹ میں جاتا ہے تو اس کے جسم سے لگتے ہی وہ اتنا غلیظ ہو جاتا ہے کہ اس پر تھوکنے کو جی کرتا ہے

ਜਿਤੁ ਮੁਖਿ ਨਾਮੁ ਨ ਊਚਰਹਿ ਬਿਨੁ ਨਾਵੈ ਰਸ ਖਾਹਿ ॥
jit mukh naam na oochrahi bin naavai ras khaahi
Similarly, the mouth with which people do not remember God and eat relishing food without remembering God,
ਜਿਸਮੂੰਹਨਾਲਮਨੁੱਖਨਾਮਨਹੀਂਸਿਮਰਦੇ, ਤੇਨਾਮਸਿਮਰਨਤੋਂਬਿਨਾਸੁਆਦਲੇਪਦਾਰਥਖਾਂਦੇਹਨ,
جِتُمُکھِنامُناۄُچرہِبِنُناوےَرسکھاہِ ॥
لیکن وہ منہ جو رب کا ذکر تو نہیں کرتا لیکن اس کا دیا ہوا لذیز کھانا کھاتا ہے

ਨਾਨਕ ਏਵੈ ਜਾਣੀਐ ਤਿਤੁ ਮੁਖਿ ਥੁਕਾ ਪਾਹਿ ॥੧॥
naanak ayvai jaanee-ai tit mukh thukaa paahi. ||
O’ Nanak, know this that such a mouth (person) is spat upon (disgraced in God’s presence).
ਸਮਝਲੈਣਾਚਾਹੀਦਾਹੈਕਿਉਸਮੂੰਹਉਤੇਫਿਟਕਾਰਾਂਪੈਂਦੀਆਂਹਨ॥੧॥
نانکایوےَجاݨیِۓَتِتُمُکھِتھُکاپاہِ ॥1॥
اے نانک ، یہ جان لوکہ اس طرح کے منہ پر تھوکنا چاہیئے

ਮਃ ੧ ॥
mehlaa 1.
Salok, First Guru:
سلوک ، پہلا گرو

ਭੰਡਿ ਜੰਮੀਐ ਭੰਡਿ ਨਿੰਮੀਐ ਭੰਡਿ ਮੰਗਣੁ ਵੀਆਹੁ ॥
bhand jammee-ai bhand nimmee-ai bhand mangan vee-aahu.
A man is conceived within a woman and is born from a woman; to a woman he is engaged and married.
ਇਸਤ੍ਰੀਤੋਂਜਨਮਲਈਦਾਹੈ, ਇਸਤ੍ਰੀਵਿਚਹੀਪ੍ਰਾਣੀਦਾਸਰੀਰਬਣਦਾਹੈ।ਇਸਤ੍ਰੀਦੀਰਾਹੀਂਹੀਕੁੜਮਾਈਤੇਵਿਆਹਹੁੰਦਾਹੈ।
بھنّڈِجنّمیِۓَبھنّڈِنِنّمیِۓَبھنّڈِمنّگݨُویِیاہُ ॥
عورت سے ہی مرد پیدا ہوتا ہے، عورت کے اندر ہی مرد بطور حمل ٹھہرتا ہے عورت کے ساتھ ہی اس کی منگنی ہوتی ہے عورت کے ساتھ ہی اس کی شادی ہوتی ہے

ਭੰਡਹੁ ਹੋਵੈ ਦੋਸਤੀ ਭੰਡਹੁ ਚਲੈ ਰਾਹੁ ॥
bhandahu hovai dostee bhandahu chalai raahu.
Through the woman, worldly relationships are formed and it is through women, one’s dynasty goes forward.
ਇਸਤ੍ਰੀਦੀਰਾਹੀਂਹੋਰਲੋਕਾਂਨਾਲਸੰਬੰਧਬਣਦਾਹੈਤੇਇਸਤ੍ਰੀਤੋਂਹੀਜਗਤਦੀਉਤਪੱਤੀਦਾਰਸਤਾਚੱਲਦਾਹੈ।
بھنّڈہُہۄوےَدۄستیبھنّڈہُچلےَراہُ ॥
عورت ہی سے اس کی دوستی ہوتی ہے اور عورت سے ہی اس کی نسل چلتی ہے

ਭੰਡੁ ਮੁਆ ਭੰਡੁ ਭਾਲੀਐ ਭੰਡਿ ਹੋਵੈ ਬੰਧਾਨੁ ॥
bhand mu-aa bhand bhaalee-ai bhand hovai banDhaan.
When his woman dies, he seeks another woman; it is through the woman that we are bonded with the world.
ਜੇਇਸਤ੍ਰੀਮਰਜਾਏਤਾਂਹੋਰਇਸਤ੍ਰੀਦੀਭਾਲਕਰੀਦੀਹੈ, ਇਸਤ੍ਰੀਤੋਂਹੀਹੋਰਨਾਂਨਾਲਰਿਸ਼ਤੇਦਾਰੀਬਣਦੀਹੈ।
بھنّڈُمُیابھنّڈُبھالیِۓَبھنّڈِہۄوےَبنّدھانُ ॥
جب اس کی عورت مر جاتی ہے ، تو وہ دوسری عورت کی تلاش کرتا ہے۔ عورت سے وہ پابند ہے(عورت اس کی مجبوری اور ضرورت ہے)

ਸੋ ਕਿਉ ਮੰਦਾ ਆਖੀਐ ਜਿਤੁ ਜੰਮਹਿ ਰਾਜਾਨ ॥
so ki-o mandaa aakhee-ai jit jameh raajaan.
How can we call that (woman) evil, who has given birth to all the kings, (queens, saints, and other great persons).
ਉਸਨੂੰਬੁਰਾਕਿਉਂਕਹੀਏ, ਜਿਸਤੋਂਪਾਤਸ਼ਾਹਪੈਦਾਹੁੰਦੇਹਨ ?
سۄکِءُمنّداآکھیِۓَجِتُجنّمہِراجان ॥
تو پھر کیوں اسے برا کہتے ہو؟ اسی سے بادشاہ پیدا ہوئے ہیں۔

ਭੰਡਹੁ ਹੀ ਭੰਡੁ ਊਪਜੈ ਭੰਡੈ ਬਾਝੁ ਨ ਕੋਇ ॥
bhandahu hee bhand oopjai bhandai baajh na ko-ay.
(In fact) it is from the woman that another woman is born and nobody is born without a woman
ਇਸਤ੍ਰੀਤੋਂਹੀਇਸਤ੍ਰੀਪੈਦਾਹੁੰਦੀਹੈ, ਕੋਈਜੀਵਇਸਤ੍ਰੀਤੋਂਬਿਨਾਪੈਦਾਨਹੀਂਹੋਸਕਦਾ।
بھنّڈہُہیبھنّڈُاۄُپجےَبھنّڈےَباجھُنکۄءِ ॥
عورت بھی عورت سے ہی پیدا ہوتی ہے، عورت نہ ہوتی تو کوئی بھی نہ ہوتا

ਨਾਨਕ ਭੰਡੈ ਬਾਹਰਾ ਏਕੋ ਸਚਾ ਸੋਇ ॥
naanak bhandai baahraa ayko sachaa so-ay.
O Nanak, it is only the eternal God who has been there without (going through the womb of a) woman.
ਹੇਨਾਨਕ! ਕੇਵਲਇਕਸੱਚਾਪ੍ਰਭੂਹੀਹੈ, ਜੋਇਸਤ੍ਰੀਤੋਂਨਹੀਂਜੰਮਿਆ।
نانکبھنّڈےَباہراایکۄسچاسۄءِ ॥
اے نانک ، صرف سچا خدا ہی عورت کے بغر ہے(وہ کسی عورت کے پیٹ سے نہیں آیا)

ਜਿਤੁ ਮੁਖਿ ਸਦਾ ਸਾਲਾਹੀਐ ਭਾਗਾ ਰਤੀ ਚਾਰਿ ॥
jit mukh sadaa salaahee-ai bhaagaa ratee chaar.
Therefore, that mouth (person) is fortunate with which are sung God’s praises,
ਮਨੁੱਖਜੋਹਮੇਸ਼ਾਂਹੀਮਾਲਕਦਾਜੱਸਉਚਾਰਨਕਰਦਾਹੈ, ਉਹਕਰਮਾਂਵਾਲਾਅਤੇਸੁੰਦਰਹੈ।
جِتُمُکھِسداسالاحیِۓَبھاگارتیچارِ ॥
وہ منہ جو مستقل طور پر خداوند کی تعریف کرتا ہے مبارک اور خوبصورت ہے۔

ਨਾਨਕ ਤੇ ਮੁਖ ਊਜਲੇ ਤਿਤੁ ਸਚੈ ਦਰਬਾਰਿ ॥੨॥
naanak tay mukh oojlay tit sachai darbaar. ||2||
O’ Nanak, their faces will shine in the Court of the eternal God (they will be received with honor in God’s presence)
ਹੇਨਾਨਕ! ਉਹੀਮੁਖਉਸੇਸੱਚੇਪ੍ਰਭੂਦੇਦਰਬਾਰਵਿਚਸੋਹਣੇਲੱਗਦੇਹਨ l
نانکتےمُکھاۄُجلےتِتُسچےَدربارِ ॥2॥
اےنانک ، ایسے چہرے سچے رب کے دربار میں روشن منور ہوں گے

ਪਉੜੀ ॥
pa-orhee.
Pauree:19
پوڑی 19

ਸਭੁ ਕੋ ਆਖੈ ਆਪਣਾ ਜਿਸੁ ਨਾਹੀ ਸੋ ਚੁਣਿ ਕਢੀਐ ॥
sabh ko aakhai aapnaa jis naahee so chun kadhee-ai.
Everyone has emotional attachments in this world, single out (and show me) the one who does not have any attachments.
ਜਗਤਵਿਚਹਰੇਕਜੀਵਨੂੰਮਮਤਾਲੱਗੀਹੋਈਹੈ; ਜਿਸਨੂੰਮਮਤਾਨਹੀਂਉਹਚੁਣਕੇਵੱਖਰਾਕਰਵਿਖਾਓ l
سبھُکۄآکھےَآپݨاجِسُناہیسۄچُݨِکڈھیِۓَ ॥
سبھی تجھ کو اپنا کہتے ہیں ۔ اے رب جو تجھے اپنا نہیں سمجھتے انہیں اٹھا کر (دوزخ میں) پھینک دیا جاتا ہے

ਕੀਤਾ ਆਪੋ ਆਪਣਾ ਆਪੇ ਹੀ ਲੇਖਾ ਸੰਢੀਐ ॥
keetaa aapo aapnaa aapay hee laykhaa sandhee-ai.
(In the end), everyone bears the consequences of his/her deeds.
ਆਪੋਆਪਣੇਕੀਤੇਕਰਮਾਂਦਾਲੇਖਾਆਪਹੀਭਰਨਾਪੈਂਦਾਹੈ।
کیِتاآپۄآپݨاآپےہیلیکھاسنّڈھیِۓَ ॥
ہر ایک کو اس کے اعمال کا بدلہ ملتا ہے۔( اس کے اعمال کے مطابق ہی اس کا حساب کتاب رکھا جاتا ہے)

ਜਾ ਰਹਣਾ ਨਾਹੀ ਐਤੁ ਜਗਿ ਤਾ ਕਾਇਤੁ ਗਾਰਬਿ ਹੰਢੀਐ ॥
jaa rahnaa naahee ait jag taa kaa-it gaarab handhee-ai.
when (we know that) we are not going to remain in this world forever, why should we ruin ourselves in arrogance?
ਜਦੋਂਇਸਜਗਤਵਿਚਸਦਾਰਹਿਣਾਹੀਨਹੀਂਹੈ, ਤਾਂਕਿਉਂਅਹੰਕਾਰਵਿਚਪੈਕੇਖਪੀਏ ?
جارہݨاناہیایَتُجگِتاکائِتُگاربِہنّڈھیِۓَ ۔ ॥
جب کسی نے اس دنیا میں مستقل طور پر (ہمیشہ)رہنا ہی نہیں تو پھر کیوں وہ غرور( اور انا) سے اپنے آپ کو برباد کر رہا ہے

ਮੰਦਾ ਕਿਸੈ ਨ ਆਖੀਐ ਪੜਿ ਅਖਰੁ ਏਹੋ ਬੁਝੀਐ ॥ ਮੂਰਖੈ ਨਾਲਿ ਨ ਲੁਝੀਐ ॥੧੯॥
mandaa kisai na aakhee-ai parh akhar ayho bujhee-ai, moorkhai naal na lujhee-ai. ||19||
After reading these words (above teachings), we must learn (this lesson) that we should not call anyone bad, and should not argue with a fool.
ਕੇਵਲਇਹਅੱਖਰ (ਉਪਦੇਸ਼) ਪੜ੍ਹਕੇਸਮਝਲਈਏਕਿਕਿਸੇਨੂੰਮੰਦਾਨਹੀਂਆਖਣਾਚਾਹੀਦਾ,ਅਤੇਮੂਰਖਨਾਲਨਹੀਂਝਗੜਣਾਚਾਹੀਦਾ l
منّداکِسےَنآکھیِۓَپڑِاکھرُایہۄبُجھیِۓَ ॥ مۄُرکھےَنالِنلُجھیِۓَ ॥ 19 ॥
کسی کوبھی برا مت کہو۔(ہدایت کے) ان لفظوں کوپڑھو اور سمجھو اور احمقوں سے بحث نہ کرو۔

ਸਲੋਕੁ ਮਃ ੧ ॥
salok mehlaa 1.
Salok, First Guru:
سلوک ، پہلا گرو

ਨਾਨਕ ਫਿਕੈ ਬੋਲਿਐ ਤਨੁ ਮਨੁ ਫਿਕਾ ਹੋਇ ॥
naanak fikai boli-ai tan man fikaa ho-ay.
O’ Nanak, when a person keeps uttering rude words, his mind and body both become rude.
ਹੇਨਾਨਕ! ਜੇਮਨੁੱਖਰੁੱਖੇਬਚਨਬੋਲਦਾਰਹੇ, ਤਾਂਉਸਦਾਤਨਅਤੇਮਨਦੋਵੇਂਰੁੱਖੇ (ਮੰਦੇ) ਹੋਜਾਂਦੇਹਨ
نانکپھِکےَبۄلِۓَتنُمنُپھِکاہۄءِ ॥
اےنانک ،تیز طرار( ناقص) الفاظ بولتے بولتے، جسم اور ذہن بھی تیز طرار(ناقص) بن جاتے ہیں۔

ਫਿਕੋ ਫਿਕਾ ਸਦੀਐ ਫਿਕੇ ਫਿਕੀ ਸੋਇ ॥
fiko fikaa sadee-ai fikay fikee so
The person who talks rudely is called a rude person and his reputation becomes that of rudeness.
ਰੁੱਖਾਬੋਲਣਵਾਲੇਮਨੁੱਖਨੂੰਰੁੱਖਾਹੀਆਖਿਆਜਾਂਦਾਹੈ, ਅਤੇਲੋਕਾਂਵਿਚਰੁੱਖਾਹੀਮਸ਼ਹੂਰਹੋਜਾਂਦਾਹੈ।
پھِکۄپھِکاسدیِۓَپھِکےپھِکیسۄءِ ॥
اسے سب سے زیادہ گستاخ کہا جاتا ہے۔ سب سے زیادہ گستاخ اس کی ساکھ ہے۔( جو شخص بدتمیزی سے بات کرتا ہے اسے بدتمیز شخص کہا جاتا ہے اور یہی بدتمیزی اس کی شہرت کی وجہ بن جاتی ہے۔)

ਫਿਕਾ ਦਰਗਹ ਸਟੀਐ ਮੁਹਿ ਥੁਕਾ ਫਿਕੇ ਪਾਇ ॥
fikaa dargeh satee-ai muhi thukaa fikay paa
The rude person isthrown out of God’s court, (and is so disgraced as if) he is being spat on his face.
.ਰੁੱਖਾਮਨੁੱਖਪ੍ਰਭੂਦੀਦਰਗਾਹਤੋਂਰੱਦਿਆਜਾਂਦਾਹੈਅਤੇਉਸਨੂੰਫਿਟਕਾਰਾਂਪੈਂਦੀਆਂਹਨ।
پھِکادرگہسٹیِۓَمُہِتھُکاپھِکےپاءِ ॥
بدتمیز شخص خدا کے دربار میں رد کر دیا جاتا ہے ایسے شخص کے منہ پر تھوکا جاتا ہے

ਫਿਕਾ ਮੂਰਖੁ ਆਖੀਐ ਪਾਣਾ ਲਹੈ ਸਜਾਇ ॥੧॥
fikaa moorakh aakhee-ai paanaa lahai sajaa-ay. ||1||
The rude person is called a fool and he is humiliated everywhere.
ਰੁੱਖੇਮਨੁੱਖਨੂੰਮੂਰਖਆਖਿਆਜਾਂਦਾਹੈ, ਅਤੇਹਰਥਾਂਉਸਦੀਬੜੀਬੇਇੱਜ਼ਤੀਹੁੰਦੀਹੈ l
پھِکامۄُرکھُآکھیِۓَپاݨالہےَسزاءِ ॥1॥
بد تمیز انسان احمق ہوتا ہے ایسے انسان کو جوتے مار کر سزا دی جاتی ہے

ਮਃ ੧ ॥
mehlaa 1.
Salok, First Guru:
سلوک، پہلا گرو

ਅੰਦਰਹੁ ਝੂਠੇ ਪੈਜ ਬਾਹਰਿ ਦੁਨੀਆ ਅੰਦਰਿ ਫੈਲੁ ॥
andrahu jhoothay paij baahar dunee-aa andar fail.
In this world, there are many people who are false (hypocrites) from inside, but from outside they have managed to established their honor (as holy persons).
ਜੋਮਨੁੱਖਮਨੋਂਤਾਂਝੂਠੇਹਨ, ਪਰਬਾਹਰਕੂੜੀਇੱਜ਼ਤਬਣਾਈਬੈਠੇਹਨ, ਅਤੇਜਗਤਵਿਚਵਿਖਾਵਾਬਣਾਈਰੱਖਦੇਹਨ,
انّدرہُجھۄُٹھےپیَجباہرِدُنیِیاانّدرِپھیَلُ ॥
ایسے لوگ باطن سے جھوٹے اورظاہر طور پر معزز بنتے ہیں۔ اس دنیا میں ایسے لوگ عام ہیں

ਅਠਸਠਿ ਤੀਰਥ ਜੇ ਨਾਵਹਿ ਉਤਰੈ ਨਾਹੀ ਮੈਲੁ ॥
athsathtirath jay naaveh utrai naahee mail.
Even if such false people go and bathe at (so called) all the sixty-eight holy places, still the filth of vices from their mind will not be removed.
ਉਹਭਾਵੇਂਅਠਾਹਠਤੀਰਥਾਂਉੱਤੇਇਸ਼ਨਾਨਕਰਨ, ਉਹਨਾਂਦੇਮਨਦੀਕਪਟਦੀਮੈਲਕਦੇਨਹੀਂਉਤਰਦੀ।
اٹھسٹھِتیِرتھجےناوہِاُترےَناہیمیَلُ ॥
اگرچہ وہ اڑسٹھ تیرتھ (عبادت کے اڑسٹھ مقدس مقامات پر)غسل کر لیں ان کے زہنوں کی غلاظت دور نہیں ہوتی

ਜਿਨ੍ਹ੍ਹ ਪਟੁ ਅੰਦਰਿ ਬਾਹਰਿ ਗੁਦੜੁ ਤੇ ਭਲੇ ਸੰਸਾਰਿ ॥
jinH pat andar baahar gudarhtay bhalay sansaar.
(On the other hand) those whose heart is soft like silk (arecompassionate and kind) but may appear rough (rude) from the outside, are the virtuous people in this world.
ਜਿਨ੍ਹਾਂਦੇਅੰਦਰਰੇਸ਼ਮ (ਕੋਮਲਤਾਤੇਪ੍ਰੇਮ) ਹੈਅਤੇਬਾਹਰਲੀਰਾਂਕਚੀਰਾਂ (ਰੁੱਖਾ-ਪਨ) , ਉਹਇਸਜੱਗਅੰਦਰਸ੍ਰੇਸ਼ਟਹਨ।
جِن٘ہپٹُانّدرِباہرِگُدڑُتےبھلےسنّسارِ ॥
اوروہ لوگ جواندر ریشم میں لپٹے ہیں اور باہر سے چیتھڑوں میں ہیں ، وہی اس دنیا میں اچھے ہیں۔

ਤਿਨ੍ਹ੍ਹ ਨੇਹੁ ਲਗਾ ਰਬ ਸੇਤੀ ਦੇਖਨ੍ਹ੍ਹੇ ਵੀਚਾਰਿ ॥
tinH nayhu lagaa rab saytee daykhnHay veechaar.
They embrace love for God, and contemplate beholding Him.
ਉਹਨਾਂਦਾਰੱਬਨਾਲਨੇਹੁਲੱਗਾਹੋਇਆਹੈਤੇਉਹਰੱਬਦਾਦੀਦਾਰਕਰਨਦੇਵਿਚਾਰਵਿਚਹੀਜੁੜੇਰਹਿੰਦੇਹਨ।
تِن٘ہنیہُلگاربسیتیدیکھن٘ہےویِچارِ ॥
وہ خداکی محبت کو تھامے رکھتے ہیں اور اسی پر غور کرتے ہیں

ਰੰਗਿ ਹਸਹਿ ਰੰਗਿ ਰੋਵਹਿ ਚੁਪ ਭੀ ਕਰਿ ਜਾਹਿ ॥
rang haseh rang roveh chup bhee kar jaahi.
In God’s Love, they sometimes laugh, and in God’s Love, they sometimes cry, and keep silent sometimes.
ਪ੍ਰਭੂਦੀਪ੍ਰੀਤਵਿੱਚਉਹਹੱਸਦੇਹਨ, ਪ੍ਰਭੂਦੀਪ੍ਰੀਤਵਿੱਚਉਹਰੋਂਦੇਹਨਅਤੇਖਾਮੋਸ਼ਭੀਹੋਜਾਂਦੇਹਨ।
رنّگِہسہِرنّگِرۄوہِچُپبھیکرِجاہِ ॥
وہ خدا کی محبت میں ہی ہنستے ہیں اور خدا کی محبت میں ہی روتے ہیں، اور وہ (عام طور پر)خاموش رہتے ہیں

ਪਰਵਾਹ ਨਾਹੀ ਕਿਸੈ ਕੇਰੀ ਬਾਝੁ ਸਚੇ ਨਾਹ ॥
parvaah naahee kisai kayree baajh sachay naah.
They do not depend on anyone else, except their True Master, God
ਉਹਨਾਂਨੂੰਸੱਚੇਖਸਮ (ਪ੍ਰਭੂ) ਤੋਂਬਿਨਾਕਿਸੇਹੋਰਦੀਮੁਥਾਜੀਨਹੀਂਹੁੰਦੀ।
پرواہناہیکِسےَکیریباجھُسچےناہ ॥
انہیں اپنے سچے رب کے علاوہ اور کسی چیز کی پرواہ نہیں ہوتی

ਦਰਿ ਵਾਟ ਉਪਰਿ ਖਰਚੁ ਮੰਗਾ ਜਬੈ ਦੇਇ ਤ ਖਾਹਿ ॥
dar vaat upar kharach mangaa jabai day-ay ta khaahi.
They ask for Naam as food for their soul, and when He gives, they partake of it.
ਉਹਮਨੁੱਖਰੱਬਦੇਦਰਤੋਂਹੀਨਾਮ-ਰੂਪਖ਼ੁਰਾਕਮੰਗਦੇਹਨ, ਜਦੋਂਰੱਬਦੇਂਦਾਹੈਤਦੋਂਖਾਂਦੇਹਨ।
درِواٹاُپرِکھرچُمنّگاجبےَدےءِتکھاہِ ॥
وہ اپنے رب کی جوکھٹ پر بیٹھ جاتے ہیں اور وہیں بیٹھے بیٹھے اس سے رزق مانگتے ہیں، پھر جب وہ انہیں عطا فرماتا ہے تب وہ اسے کھاتے ہیں

ਦੀਬਾਨੁ ਏਕੋ ਕਲਮ ਏਕਾ ਹਮਾ ਤੁਮ੍ਹ੍ਹਾ ਮੇਲੁ ॥
deebaan ayko kalam aykaa hamaa tumHaa mayl.
(They firmly believe that) God Himself is the judge and He Himself is the writer of our deeds and all people, with good or bad deeds, ultimately meet there in His court.
ਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਫ਼ੈਸਲਾਕਰਨਵਾਲਾਹੈਤੇਆਪਹੀਲੇਖਾਲਿਖਣਵਾਲਾਹੈ, ਸਾਰੇਚੰਗੇਮੰਦੇਜੀਵਾਂਦਾਮੇਲਾਉਸੇਦੇਦਰਤੇਹੁੰਦਾਹੈ;
دیِبانُایکۄقلمایکاہماتُم٘ہامیلُ ॥
رب کی ایک ہی عدالت ہے ، اور(امیر غریب کے لئے) اس کاایک ہی قلم ہے۔ وہاں ، آپ اور میں ملیں گے

ਦਰਿ ਲਏ ਲੇਖਾ ਪੀੜਿ ਛੁਟੈ ਨਾਨਕਾ ਜਿਉ ਤੇਲੁ ॥੨॥
dar la-ay laykhaa peerhchhutai naankaa ji-o tayl. ||2||
O’ Nanak, in God’s court, the account of everyone is examined and the guilty are crushed, like oil seeds in the press (severely punished) ||2|
ਨਾਨਕ! ਪ੍ਰਭੂਦੇਦਰਬਾਰਅੰਦਰਸਭਤੋਂਕੀਤੇਕਰਮਾਂਦਾਲੇਖਾਲਿਆਜਾਂਦਾਹੈਤੇਮੰਦੇਮਨੁੱਖਾਂਇਉਂਪੀੜੇਜਾਂਦੇਹਨਜਿਵੇਂਤੇਲਵਾਲੇਬੀਜਾਂ l
درِلۓلیکھاپیِڑِچھُٹےَنانکاجِءُتیلُ ॥2॥
اے نانک ، خدا کی عدالت میں سب کے کھاتوں کی جانچ ہو گی ، گنہگاروں کو تیل کے بیجوں کی طرح کچل دیا جائے گا(سخت سزا دی جائے گی)

ਪਉੜੀ ॥
pa-orhee.
Pauree:20
پوڑی 20

ਆਪੇ ਹੀ ਕਰਣਾ ਕੀਓ ਕਲ ਆਪੇ ਹੀ ਤੈ ਧਾਰੀਐ ॥
aapay hee karnaa kee-o kal aapay hee tai Dhaaree-ai.
O’ God, You Yourself have created the creation, and You Yourself have infused Your power into it.
(ਹੇਪ੍ਰਭੂ!) ਤੂੰਆਪਹੀਇਹਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀਰਚੀਹੈਅਤੇਤੂੰਆਪਹੀਇਸਵਿਚ (ਜਿੰਦਰੂਪ) ਸੱਤਿਆਪਾਈਹੈ।
آپےہیکرݨاکیِئۄکلآپےہیتےَدھاریِۓَ ॥
تو نے ہی ساری مخلوق پیدا کی ہے اور تو نے ہی اس میں اپنی طاقت تفویض کی ہے(ڈالی ہے)