Urdu-Raw-Page-284

ਨਾਨਕ ਕੈ ਮਨਿ ਇਹੁ ਅਨਰਾਉ ॥੧॥
naanak kai man ih anraa-o. ||1||
This is the yearning of Nanak’s mind. ||1||
نانککےَمنِاِہُانراءُ
انراؤ۔ خواہش ۔کشش۔ ارادہ ۔
اے ناک یہ میری دلی خواہش ہے

ਮਨਸਾ ਪੂਰਨ ਸਰਨਾ ਜੋਗ ॥
mansaa pooran sarnaa jog.
God is capable of fulfilling our wishes and providing us refuge.
منساپۄُرنسرناجۄگ
منسا۔ منشا۔ ارادہ ۔ خواہش۔ پورن۔ مکمل ۔ سرنا۔ پناہ۔ سایہ ۔ جوگ۔ قابل با توفیق
خدا انسانی خواہشات کو پایہ تکمیل تک پہچانے کی حیثیت رکھتا ہے ۔

ਜੋ ਕਰਿ ਪਾਇਆ ਸੋਈ ਹੋਗੁ ॥
jo kar paa-i-aa so-ee hog.
Whatever God has inscribed in one’s destiny, is what takes place.
جۄکرِپائِیاسۄئیہۄگُ
۔ کر ۔ ہاتھ۔ سوئی ۔ وہی ۔ ہوگ۔ ہوگا۔
۔ جو اس کی قسمت میں تحریر ہے وہی ہوگا۔

ਹਰਨ ਭਰਨ ਜਾ ਕਾ ਨੇਤ੍ਰ ਫੋਰੁ ॥ ਤਿਸ ਕਾ ਮੰਤ੍ਰੁ ਨ ਜਾਨੈ ਹੋਰੁ ॥
haran bharan jaa kaa naytar for. tis kaa mantar na jaanai hor.
God can destroy or create the universe in twinkling of an eye; No one other than Him, knows the mystery of His resolve.
ہرنبھرنجاکانیت٘رپھۄرُ تِسکامنّت٘رُنجانےَہۄرُ
ہرن۔ مٹانا۔ فناہ کرنا۔ بھرن۔ پرورش ۔ نیتر۔ آنکھ ۔ پھور۔ جھپکنا ۔ منتر۔ پوشیدہ راز ۔ ہور ۔ دوسرا
وہ آنکھ جھپکنے کے وقفے میں فناہ اور پرورش کی حثیثت رکھتا ہے ۔ اس کے پوشیدہراز دنیا میں دوسرا کوئی نہیں سمجھتا

ਅਨਦ ਰੂਪ ਮੰਗਲ ਸਦ ਜਾ ਕੈ ॥
anad roop mangal sad jaa kai.
He is the embodiment of ecstasy and everlasting joy,
اندرۄُپمنّگلسدجاکےَ
۔ انند۔ سکون ۔ منگل ۔ خوشی۔ سد ۔ ہمیشہ ۔ جاکے ۔ جس کے ۔
۔ جس خدا کے گھر میں ہمیشہ سکون اور خوشیاںہیں

ਸਰਬ ਥੋਕ ਸੁਨੀਅਹਿ ਘਰਿ ਤਾ ਕੈ ॥
sarab thok sunee-ah ghar taa kai.
and all boons are heard to be in His possession.
سربتھۄکسُنیِئہِگھرِتاکےَ
سرب تھوک ۔ کل کائنات ۔
اور تمام عالم و کائنات کی نعمتیں اس کے گھر میں سنتے ہیں

ਰਾਜ ਮਹਿ ਰਾਜੁ ਜੋਗ ਮਹਿ ਜੋਗੀ ॥
raaj meh raaj jog meh jogee.
Among kings, He is the greatest King; among yogis, He is the holiest Yogi.
راجمہِراجُجۄگمہِجۄگی
۔ حکمرانوں میں حکمران خدا رسیدگان میں خدا رسیدہ

ਤਪ ਮਹਿ ਤਪੀਸਰੁ ਗ੍ਰਿਹਸਤ ਮਹਿ ਭੋਗੀ ॥
tap meh tapeesar garihsat meh bhogee.
Among ascetics, He is the highest Ascetic; among householders, He is the indulging householder.
تپمہِتپیِسرُگ٘رِہستمہِبھۄگی
گر ہست ۔ خانہ داری گھر یلو زندگی ۔ بھوگی ۔ خانہ دار ۔ قبیل وار ۔ گھر اری
عابدوں میں عابد اور خانہ داروں میں خانہ دار اور قبیلہ دار ہے
۔

ਧਿਆਇ ਧਿਆਇ ਭਗਤਹ ਸੁਖੁ ਪਾਇਆ ॥
Dhi-aa-ay Dhi-aa-ay bhagtah sukh paa-i-aa.
By continuous meditation on Him, His devotees have found peace.
دھِیاءِدھِیاءِبھگتہسُکھُپائِیا
۔ دھیائے ۔ ہوش و حواس سے یکسو کرکے توجہ ۔
عاشقان الہٰی اس کی یاد سے آرام و آسائش پاتے ہیں۔

ਨਾਨਕ ਤਿਸੁ ਪੁਰਖ ਕਾ ਕਿਨੈ ਅੰਤੁ ਨ ਪਾਇਆ ॥੨॥
naanak tis purakh kaa kinai ant na paa-i-aa. ||2||
O’ Nanak, no one has found the limits of that Supreme Being. ||2||
نانکتِسُپُرکھکا کِنےَانّتُنپائِیا
تس پر کھ کااس انسان کا۔کنے ۔ کسی نے ۔
اے نانک کسی نے بھی اس کی حیثیت و ہستی کا اندازہ نہیں پائیا ۔

ਜਾ ਕੀ ਲੀਲਾ ਕੀ ਮਿਤਿ ਨਾਹਿ ॥
jaa kee leelaa kee mit naahi.
There is no limit to His play;
جاکیلیِلاکیمِتِناہِ
لیلا۔ کھیل۔ مت۔ اندازہ ۔
اس کے کھیل کی کوئی حد نہیں ہے

ਸਗਲ ਦੇਵ ਹਾਰੇ ਅਵਗਾਹਿ ॥
sagal dayv haaray avgaahi.
all the demigods have grown weary of searching for it.
سگلدیوہارےاوگاہِ
سگل ۔ سارے ۔ دیو ۔ فرشتے ۔ دیوتے ۔ ہارے ۔ شکست کھا گئے ۔ اوگا ہے ۔ گہری ۔ جستجو کرتے ہوئے
سارے دیوتے فرشتے اس کی جستجو کرتے کرتے شکست کھا بیٹھے

ਪਿਤਾ ਕਾ ਜਨਮੁ ਕਿ ਜਾਨੈ ਪੂਤੁ ॥
pitaa kaa janam ke jaanai poot.
What does the son know of his father’s birth?
پِتاکاجنمُکِجانےَپۄُتُ
بیٹا اپنے باپ کی پیدائش کے بارے کیسے کچھ جان سکتا ہے

ਸਗਲ ਪਰੋਈ ਅਪੁਨੈ ਸੂਤਿ ॥
sagal paro-ee apunai soot.
As all beads are strung in a rosary, He has bound the entire Universe under His Law.
سگلپرۄئیاپُنےَسۄُتِ
۔ اپنے سوت۔ زیر نظام ۔ زیر فرمان۔
جیسے تمام دانےمالا میں جکڑے ہوئے ہیں اسی طرحاس نے ساری کائنات کو اپنے قانون کے تحت باندھ رکھا ہے

ਸੁਮਤਿ ਗਿਆਨੁ ਧਿਆਨੁ ਜਿਨ ਦੇਇ ॥ ਜਨ ਦਾਸ ਨਾਮੁ ਧਿਆਵਹਿ ਸੇਇ ॥
sumat gi-aan Dhi-aan jin day-ay. jan daas naam Dhi-aavahi say-ay.
Those humble devotees upon whom He bestows good sense, spiritual wisdom and meditation, remember Him with love and devotion.
سُمتِگِیانُدھِیانُجِندےءِ جنداسنامُدھِیاوہِسےءِ
سمت ۔ اچھی سمجھ ۔ اچھی سوچ ۔ گیان ۔ علم ۔ دھیان۔ توجہ ۔ جن دئے ۔ جس نے دیئے ۔جن داس ۔ وہی خادم۔ دھیاوے سیئے ۔ وہی اسکو یاد اور ریاض کرتا ہے
وہ عاجز عقیدت مند جن پر وہ نیک نیتی ، روحانی دانشمندی اور مراقبہ عطا کرتا ہے ، اسے محبت اور عقیدت سے یاد کرتے ہیں

ਤਿਹੁ ਗੁਣ ਮਹਿ ਜਾ ਕਉ ਭਰਮਾਏ ॥
tihu gun meh jaa ka-o bharmaa-ay.
He leads some astray by indulging them in the three qualities of Maya (vice, power and virtue),
تِہُگُݨمہِجاکءُبھرماۓ
۔ تیہہ گن ۔ تینوں مادیاتی اوصاف ۔ ترفی ۔ سچائی ۔اور لالچ ۔ بھر مائے ۔ بھٹکاتا ہے ۔
وہ ان کو مایا کی تین خصوصیات (نائب ، طاقت اور خوبی) میں شامل کرکے کسی گمراہی کی راہ پر گامزن ہے۔

ਜਨਮਿ ਮਰੈ ਫਿਰਿ ਆਵੈ ਜਾਏ ॥
janam marai fir aavai jaa-ay.
and they keep wandering in the cycles of birth and death.
جنمِمرےَپھِرِآوےَجاۓ
۔ جنم مرئے پھر آوے جائے ۔
تناسخ میں پڑا رہتا ہے

ਊਚ ਨੀਚ ਤਿਸ ਕੇ ਅਸਥਾਨ ॥
ooch neech tis kay asthaan.
God resides in all these high and low spiritual states of mind (in people of all states of mind).
اۄُچنیِچتِسکےاستھان
۔ بلندی و پسماندگی ہر جگہ بستا ہے ۔

ਜੈਸਾ ਜਨਾਵੈ ਤੈਸਾ ਨਾਨਕ ਜਾਨ ॥੩॥
jaisaa janaavai taisaa naanak jaan. ||3||
As He inspires mortals to know Him, O’ Nanak, so is He known. ||3||
جیَساجناوےَتیَسانانکجان
اے نانک جیسی عقل و ہوش انسان کو عنایت کرتا ہے ویسا انسان ہوجاتا ہے

ਨਾਨਾ ਰੂਪ ਨਾਨਾ ਜਾ ਕੇ ਰੰਗ ॥
naanaa roop naanaa jaa kay rang.
Many are His forms; many are His colors.
نانارۄُپناناجاکےرنّگ
نانا ۔ کئی ۔ روپ ۔ شکلیں۔ رنگ ۔ پیار۔
اے خدا تو بیشمار شکلوں اور صورتوں والا ہے

ਨਾਨਾ ਭੇਖ ਕਰਹਿ ਇਕ ਰੰਗ ॥
naanaa bhaykh karahi ik rang.
Many are the appearances which He assumes and yet, He is only One of its kind.
نانابھیکھکرہِاِکرنّگ
بھیکھ ۔ بھیس۔ اک رنگ ۔ واحد۔
۔ تیرے بیشمار بھیس اور رنگ ہیں ۔

ਨਾਨਾ ਬਿਧਿ ਕੀਨੋ ਬਿਸਥਾਰੁ ॥
naanaa biDh keeno bisthaar.
In numerous ways He has extended Himself (expanded His universe),
نانابِدھِکیِنۄبِستھارُ
بدھ ۔ طریقے ۔ وستھار۔ پھیلاؤ ۔
خدا نے بیشمار طریقوں سے اپنا پھیلا ؤ کیا ہے ۔ بھیس بنائے طرح طرح کے

ਪ੍ਰਭੁ ਅਬਿਨਾਸੀ ਏਕੰਕਾਰੁ ॥
parabh abhinaasee aikankaar.
but still, He is eternal and the only One Creator.
پ٘ربھُابِناسیایکنّکارُ
پرتھ واناسی ۔ لافناہ خدا۔ ایکنکار۔ واحد خدا۔
تب بھی واحد ہےخدا ۔

ਨਾਨਾ ਚਲਿਤ ਕਰੇ ਖਿਨ ਮਾਹਿ ॥
naanaa chalit karay khin maahi.
He performs His many plays in an instant.
ناناچلِتکرےکھِنماہِ
چلت۔ کھیل۔ برتاؤ۔ کھن ماہے ۔ پل بھر میں
پل بھر میں بیشمار کھیل تماشے کرتا ہے

ਪੂਰਿ ਰਹਿਓ ਪੂਰਨੁ ਸਭ ਠਾਇ ॥
poor rahi-o pooran sabh thaa-ay.
The Perfect God is pervading all places.
پۄُرِرہِئۄپۄُرنُسبھٹھاءِ
۔ پوررہیو پورن ۔ مکمل طور پر بستا ہے ۔سب ٹھائے۔ سب جگہ
اور ہر جگہ و ہ بستا ہے

ਨਾਨਾ ਬਿਧਿ ਕਰਿ ਬਨਤ ਬਨਾਈ ॥
naanaa biDh kar banat banaa-ee.
In so many ways, He has created the creation,
نانابِدھِکرِبنتبنائی
۔ نانا بدھ۔ بیشمار طریقوں سے ۔ بنت بنائے ۔ منصوبے تیار کرکے ۔
۔ بیشمار طریقے اور منصوبے وہ بناتا ہے ۔

ਅਪਨੀ ਕੀਮਤਿ ਆਪੇ ਪਾਈ ॥
apnee keemat aapay paa-ee.
and He Himself has appraised His worth.
اپنیقیِمتِآپےپائی
خود ہی قدر وقیمت پاتا ہے ۔

ਸਭ ਘਟ ਤਿਸ ਕੇ ਸਭ ਤਿਸ ਕੇ ਠਾਉ ॥
sabh ghat tis kay sabh tis kay thaa-o.
All hearts are His, and all places are His (all the creation belongs to Him).
سبھگھٹتِسکے سبھتِسکےٹھاءُ
ہر دل میں ہے ٹھکانا اسکا ہر دل میں بستا ہے ۔

ਜਪਿ ਜਪਿ ਜੀਵੈ ਨਾਨਕ ਹਰਿ ਨਾਉ ॥੪॥
jap jap jeevai naanak har naa-o. ||4||
O’ Nanak, His slave lives by meditating on God’s Name”.||4||
جپِجپِجیِوےَنانکہرِناءُ
یاد خدا سے ریاض خدا سے روحانی زندگی نانک پاتا ہے ۔

ਨਾਮ ਕੇ ਧਾਰੇ ਸਗਲੇ ਜੰਤ ॥
naam kay Dhaaray saglay jant.
Naam is the Support of all creatures.
نامکےدھارےسگلےجنّت
نام۔ سچ ۔ خدا ۔ سچ ۔ حق و حقیقت ۔ دھارے ۔ آسرے ۔ سگلے ۔ سارے ۔ جنت۔ جاندار۔
تمام جاندار خدا کے سہارے ہیں

ਨਾਮ ਕੇ ਧਾਰੇ ਖੰਡ ਬ੍ਰਹਮੰਡ ॥
naam kay Dhaaray khand barahmand.
Naam is the Support of the earth and the solar systems.
نامکےدھارےکھنّڈب٘رہمنّڈ
کھنڈ ۔ زمین کے حصے ۔ برہمنڈ۔ خدا ۔ کائنات قدرت
اور سارا عالم خدا کے سہارے ہے

ਨਾਮ ਕੇ ਧਾਰੇ ਸਿਮ੍ਰਿਤਿ ਬੇਦ ਪੁਰਾਨ ॥
naam kay Dhaaray simrit bayd puraan.
Naam is the Support of the Smritis, the Vedas and the Puranas.
نامکےدھارےسِم٘رِتِبیدپُران
۔ سمرت۔ سمرتیاں وغیرہ
۔ نام اور سچ کے سہارے ہی سمرتیاں ویدپران ہیں

ਨਾਮ ਕੇ ਧਾਰੇ ਸੁਨਨ ਗਿਆਨ ਧਿਆਨ ॥
naam kay Dhaaray sunan gi-aan Dhi-aan.
Naam is the Support by which we hear of spiritual wisdom and meditation.
نامکےدھارےسُننگِیاندھِیان
۔ علم کے متعلق گفت و شید ا ور ان کو سنا بھی نام کے آسرے ہے اور ہوش و ہواس یکسو کرنا بھی خدا کے سہارے ہے ۔

ਨਾਮ ਕੇ ਧਾਰੇ ਆਗਾਸ ਪਾਤਾਲ ॥
naam kay Dhaaray aagaas paataal.
Naam is the Support of the Akashic ethers (skies) and the nether regions.
نامکےدھارےآگاسپاتال
۔ آگاس۔ آسمان۔ پاتال ۔ زیر زمین ۔
زمین و آسمان اور زیر زمین بھی خدا کے آسرا قائم ہے

ਨਾਮ ਕੇ ਧਾਰੇ ਸਗਲ ਆਕਾਰ ॥
naam kay Dhaaray sagal aakaar.
Naam is the Support of all bodies (all forms of life).
نامکےدھارےسگلآکار
آکار۔ پھیلاؤ ۔
۔ غرض یہ کہ تمام پھیلاؤ ہی خدا کے آسرے قائم ہے ۔

ਨਾਮ ਕੇ ਧਾਰੇ ਪੁਰੀਆ ਸਭ ਭਵਨ ॥
naam kay Dhaaray puree-aa sabh bhavan.
Naam is the Support of all the worlds and realms.
نامکےدھارےپُریِیاسبھبھون
پریاں۔ عالم کے حصے ۔ ملک ۔ براعظم
نام آسرے تینوں عالم ہی خدا کے سہارے قائم ہیں

ਨਾਮ ਕੈ ਸੰਗਿ ਉਧਰੇ ਸੁਨਿ ਸ੍ਰਵਨ ॥
naam kai sang uDhray sun sarvan.
By meditating and listening to God’s name, many have been saved from vices.
نامکےَسنّگِاُدھرےسُنِس٘رون
سرون ۔ کان ۔
۔ اور الہٰی نام کو سن کر ہی انسان کو اسرا ملتا ہے

ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਜਿਸੁ ਆਪਨੈ ਨਾਮਿ ਲਾਏ ॥
kar kirpaa jis aapnai naam laa-ay.
Those whom God attaches to His Name by His grace,
کرِکِرپاجِسُآپنےَنامِلاۓ
خدا جس کو اپنی کرم و عنایت سے نام سے رشتہ بناتا ہے

ਨਾਨਕ ਚਉਥੇ ਪਦ ਮਹਿ ਸੋ ਜਨੁ ਗਤਿ ਪਾਏ ॥੫॥
naanak cha-uthay pad meh so jan gat paa-ay. ||5||
O’ Nanak, in the fourth state, those humble servants attain liberation (from thecycle of birth and death). ||5||
نانکچئُتھےپدمہ سۄجنُگتِپاۓ ِ
۔ اے نانک وہ چوتھی روحانی منزل پالیتا ہے ۔

ਰੂਪੁ ਸਤਿ ਜਾ ਕਾ ਸਤਿ ਅਸਥਾਨੁ ॥
roop sat jaa kaa sat asthaan.
Whose form is eternal and whose seat of power is eternal,
رۄُپُستِجاکاستِاستھانُ
روپ ۔ شکل ۔ ست ۔ سچ ۔ صدیوی ۔ استھان ۔ ٹھکانہ
جس کی شکل و صورت ہے سچی اور سچا ہے جسکا مقام۔

ਪੁਰਖੁ ਸਤਿ ਕੇਵਲ ਪਰਧਾਨੁ ॥
purakh sat kayval parDhaan.
is all-pervading Eternal Being and is supreme.
پُرکھُستِکیولپردھانُ
۔ پرکھ۔ وجود ۔ ہستی ۔ کیول۔ صرف۔ پروھان۔ اعلے ہستی
خالق ہے خلقت کا مالک ہے ۔ سب سے بلند ہستیکا مالک ہے

ਕਰਤੂਤਿ ਸਤਿ ਸਤਿ ਜਾ ਕੀ ਬਾਣੀ ॥ ਸਤਿ ਪੁਰਖ ਸਭ ਮਾਹਿ ਸਮਾਣੀ ॥
kartoot sat sat jaa kee banee. sat purakh sabh maahi samaanee.
That True all-pervading God whose deeds are true and true is His word, is permeating all.
کرتۄُتِستِستِجاکیباݨی ستِپُرکھسبھماہِسماݨی
۔کر توت ۔ اعمال۔ کامل۔ بانی ۔ کلام۔ بول۔ سمانی ۔ بستا ہے ۔
۔ سچے ہیں اعمال اس کے سچے کاموں والا ہے ۔ سچا اسکا کلام بھی ہے

ਸਤਿ ਕਰਮੁ ਜਾ ਕੀ ਰਚਨਾ ਸਤਿ ॥
sat karam jaa kee rachnaa sat.
His creation is true and true are His actions.
ستِکرمُجاکیرچناستِ
کرم ۔ اعمال۔ رچنا۔ اسکی پیدا کی ہوئی ۔ کائنات ۔
۔ سچا ہے وہ خالق سچا سچا سب میں بستا ہے ۔ سچے فعل افعال ہیں اس کے سچا پیدا کیا پسار ہے

ਮੂਲੁ ਸਤਿ ਸਤਿ ਉਤਪਤਿ ॥
mool sat sat utpat.
His root (beginning) is existentially true, and true is what originates from it.
مۄُلُستِستِاُتپتِ
مول ۔ بنیاد۔ اتپت ۔ پیدائش کی ہوئی ۔
۔ بنیاد ہے سچ پر اس کی سچ ہی کیا ہے پیدا۔

ਸਤਿ ਕਰਣੀ ਨਿਰਮਲ ਨਿਰਮਲੀ ॥
sat karnee nirmal nirmalee.
His abiding will is purest of the pure.
ستِکرݨینِرملنِرملی
نرمل نرملی ۔ پاک سے زیادہ پاک ۔
سچے ہیں اعمال اس کے پاک سے بھی پاک ہیں وہ ۔

ਜਿਸਹਿ ਬੁਝਾਏ ਤਿਸਹਿ ਸਭ ਭਲੀ ॥
jisahi bujhaa-ay tiseh sabh bhalee.
All goes well for the one, whom God enables to know His Will.
جِسہِبُجھاۓتِسہِسبھبھلی
بجھائے ۔ سمجھائے ۔ تسے ۔ اسے ۔ سب بھلی ۔ سارا ۔ تمام نیک ہے ۔
جس کو سمجھائے وہ سب کو نیک بنائے وہ ۔

ਸਤਿ ਨਾਮੁ ਪ੍ਰਭ ਕਾ ਸੁਖਦਾਈ ॥
sat naam parabh kaa sukh-daa-ee.
The everlasting Naam is the Giver of peace.
ستِنامُپ٘ربھکاسُکھدائی
ست نام۔ سچا نام۔ پرتھ ۔ خدا۔ سکھدائی ۔ آرام دینے والا۔ امدادی ۔
سچا نام خدا کا ہے ۔ سب کو سکھ دینے والا ہے ۔

ਬਿਸ੍ਵਾਸੁ ਸਤਿ ਨਾਨਕ ਗੁਰ ਤੇ ਪਾਈ ॥੬॥
bisvaas sat naanak gur tay paa-ee. ||6||
O’ Nanak, this faith is obtained only through the Guru. ||6||
بِس٘واسُستِنانکگُرتےپائی
بشواس۔ بھروسا ۔ یقین ۔ گر ۔ مرشد
یہ سچا ایمان و صدق ہمیشہ نانک مرشد سے پائیا جاتا ہے ۔

ਸਤਿ ਬਚਨ ਸਾਧੂ ਉਪਦੇਸ ॥
sat bachan saaDhoo updays.
The Teachings and the Instructions of the Guru are true for ever.
ستِبچنسادھۄُاُپدیس
سادہو اپیدس۔ واعظ پاکدامن۔ستبچن ۔ سچا کلام۔
واعظ یا نصیحت عارفان سچ سچی اور دیرپا ہے ۔

ਸਤਿ ਤੇ ਜਨ ਜਾ ਕੈ ਰਿਦੈ ਪ੍ਰਵੇਸ ॥
sat tay jan jaa kai ridai parvays.
Those who permeate these teachings into their heart, also become true (liberated from the cycles of birth and death).
ستِتےجنجاکےَرِدےَپ٘رویس
ست تے جن۔ سچے ہیں وہ انسان ۔ جا کے روے پر ویس ۔ جن کے دل میں بس جائے خدا۔
اور جن کے دل میں بس جاتا ہے وہ بھی سچا ہوجاتا ہے ۔

ਸਤਿ ਨਿਰਤਿ ਬੂਝੈ ਜੇ ਕੋਇ ॥
sat nirat boojhai jay ko-ay.
If one comes to realize the depth of the eternal God’s love,
ستِنِرتِبۄُجھےَجےکۄءِ
ست نرت۔ سچا خیال۔ بوجھے ۔ سمجھے ۔
سچا ہے خیال سمجھے اگر کوئی ۔

ਨਾਮੁ ਜਪਤ ਤਾ ਕੀ ਗਤਿ ਹੋਇ ॥
naam japat taa kee gat ho-ay.
that person meditates on Naam and achieves an elevated spiritual state.
نامُجپتتاکیگتِہۄءِ
نام جپت ۔ نام کی ریاض و یاد ۔ گت۔ نجات۔ ذہنی غلامی سے چھٹکارہ ۔ مراد آزادی ۔
نام کی یاد سے اونچی منزل پاتا ہے ۔

ਆਪਿ ਸਤਿ ਕੀਆ ਸਭੁ ਸਤਿ ॥
aap sat kee-aa sabh sat.
God Himself is eternal, and all that He has created is also eternal.
آپِستِکیِیاسبھُستِ
خدا خود سچ ہے جو کرتاہے وہ بھی سچ ہے

ਆਪੇ ਜਾਨੈ ਅਪਨੀ ਮਿਤਿ ਗਤਿ ॥
aapay jaanai apnee mit gat.
He Himself knows His worth and limit.
آپےجانےَاپنیمِتِگتِ
مت۔ اندازہ ۔
اپنے آپ کی حیثیت و قوت کا اندازہ اسی کو ہے ۔