Urdu-Raw-Page-1282

ਪਉੜੀ॥
pa-orhee.
Pauree:
پئُڑیِ ॥

ਅਤੁਲੁਕਿਉਤੋਲੀਐਵਿਣੁਤੋਲੇਪਾਇਆਨਜਾਇ॥
atul ki-o tolee-ai vintolay paa-i-aa na jaa-ay.
How can the unweighable be weighed? Without weighing Him, He cannot be obtained.
(O’ my friends), how can one evaluate (the qualities) of (God) who is beyond any evaluation? He cannot be realized without evaluating (Him or reflecting on His qualities).
ਪਰਮਾਤਮਾਅਤੁੱਲਹੈ, ਉਸਦੇਸਾਰੇਗੁਣਜਾਚੇਨਹੀਂਜਾਸਕਦੇ; ਪਰਉਸਦੇਗੁਣਾਂਦੀਵਿਚਾਰਕਰਨਤੋਂਬਿਨਾਉਸਦੀਪ੍ਰਾਪਤੀਭੀਨਹੀਂਹੁੰਦੀ।
اتُلُ کِءُ تولیِئےَ ۄِنھُ تولے پائِیا ن جاءِ ॥
اتل۔ جو تالیا نہ جاسکے ۔ مراد جسکی قدروقیمت سمجھ سے باہر ہے ۔ کیو ۔ کسے ۔ تولیئے ۔ سمجھیں۔ بن تولے ۔ بغیر سمجھے ۔ پائیا نہ جائے ۔ حصول ممکن نہیں۔
خدا جو انسانی رسائی عقل و ہوش سے بعید ہے اسکو کیسےس مجھیں مگر سوجے سمجھے اسکا وصل ملاپ و دیدار ھاصل نہیں ہو سکتا۔

ਗੁਰਕੈਸਬਦਿਵੀਚਾਰੀਐਗੁਣਮਹਿਰਹੈਸਮਾਇ॥
gur kai sabad veechaaree-ai gun meh rahai samaa-ay.
Reflect on the Word of the Guru’s Shabad, and immerse yourself in His Glorious Virtues.
(We can reflect on Him) through (Gurbani) the word of the Guru. (One who does that) remains merged in His virtues.
ਪ੍ਰਭੂਦੇਗੁਣਾਂਦੀਵਿਚਾਰਸਤਿਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਰਾਹੀਂਹੋਸਕਦੀਹੈ (ਜੋਮਨੁੱਖਵਿਚਾਰਕਰਦਾਹੈਉਹ) ਉਸਦੇਗੁਣਾਂਵਿਚਮਗਨਰਹਿੰਦਾਹੈ।
گُر کےَ سبدِ ۄیِچاریِئےَ گُنھ مہِ رہےَ سماءِ ॥
گر کے سبد۔ کلام و واعظ مرشد۔ وچاریئے ۔ سوچیں سمجھیں۔ گن مینہ رہے سمائے ۔ تو اس وصف میں مجذوب رہے ۔ مراد اچھے اوصاف کے دل میں بسانے مین مصروف رہے ۔ مراد باوصف انسان خدا میں محو و مجزوب رہتا ہے
مرشد کے سبق و اعظ و کلام سے سوا سمجھا جا سکتا ہے جو سوچتا سمجھتا ہے اسکے اوصاف میں محو ومجذوب رہتا ہے ۔

ਅਪਣਾਆਪੁਆਪਿਤੋਲਸੀਆਪੇਮਿਲੈਮਿਲਾਇ॥
apnaa aap aap tolsee aapay milai milaa-ay.
He Himself weighs Himself; He unites in Union with Himself.
(The fact is that only) He Himself can evaluate Him (and tell how great is He), and on His own He meets (some through the Guru).
ਆਪਣੇਆਪਨੂੰਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਤੋਲਸਕਦਾਹੈ (ਭਾਵ, ਪ੍ਰਭੂਕਿਤਨਾਵੱਡਾਹੈਇਹਗੱਲਉਹਆਪਹੀਜਾਣਦਾਹੈ) ਉਹਆਪਹੀ (ਆਪਣੇਸੇਵਕਾਂਨੂੰਗੁਰੂਦਾ) ਮਿਲਾਇਆਮਿਲਦਾਹੈ।
اپنھا آپُ آپِ تولسیِ آپے مِلےَ مِلاءِ ॥
۔ اپنا آپ تولسی ۔ جب انسان کو اپنی قدروقیمت نیک و بد اعمال اوصاف کو سمجھے تو اسے خدا از خود ملتا ہے ۔
خدا کو اپنی قدرومنزلت کی سمجھ ہے ۔ اور وہ خود ہی ملتا اور ملاتا ہے

ਤਿਸਕੀਕੀਮਤਿਨਾਪਵੈਕਹਣਾਕਿਛੂਨਜਾਇ॥
tis kee keemat naa pavai kahnaa kichhoo na jaa-ay.
His value cannot be estimated; nothing can be said about this.
His worth cannot be estimated, and nothing can be said about it.
ਪ੍ਰਭੂਦਾਮੁੱਲਨਹੀਂਪੈਸਕਦਾ; (ਉਹਕੇਡਾਵੱਡਾਹੈਇਸਬਾਰੇ) ਕੋਈਗੱਲਆਖੀਨਹੀਂਜਾਸਕਦੀ।
تِس کیِ کیِمتِ نا پۄےَ کہنھا کِچھوُ ن جاءِ ॥
۔ چونکہ وہ بیمشار اور لامحدود ہتی ہے ۔ اس لئے اسکے اوصاف اور قدرومنزلت بیان نہیں ہو سکتی ۔

ਹਉਬਲਿਹਾਰੀਗੁਰਆਪਣੇਜਿਨਿਸਚੀਬੂਝਦਿਤੀਬੁਝਾਇ॥
ha-o balihaaree gur aapnay jin sachee boojhditee bujhaa-ay.
I am a sacrifice to my Guru; He has made me realize this true realization.
Therefore I am a sacrifice to my Guru who has given me true understanding.
ਮੈਂਕੁਰਬਾਨਹਾਂਆਪਣੇਗੁਰੂਤੋਂਜਿਸਨੇ (ਮੈਨੂੰਸੱਚੀਸੂਝਦੇਦਿੱਤੀਹੈ)।
ہءُ بلِہاریِ گُر آپنھے جِنِ سچیِ بوُجھ دِتیِ بُجھاءِ ॥
سچی بوجھ ۔ سچی سمجھ ۔ جگت سے ۔ دنیا لٹ رہی ہے
قربان ہوں میں اپنے مرشد پر جسنے حقیقی واصلی سمجھ سمجھا دی ۔

ਜਗਤੁਮੁਸੈਅੰਮ੍ਰਿਤੁਲੁਟੀਐਮਨਮੁਖਬੂਝਨਪਾਇ॥
jagat musai amrit lootee-ai manmukh boojh na paa-ay.
The world has been deceived, and the Ambrosial Nectar is being plundered. The self-willed manmukh does not realize this.
(Without the Guru’s guidance), the world is being cheated and (God’s) nectar is being plundered but the self-conceited persons are not realizing this thing.
(ਗੁਰੂਦੀਮੱਤਤੋਂਬਿਨਾ) ਜਗਤਠੱਗਿਆਜਾਰਿਹਾਹੈ, ਅੰਮ੍ਰਿਤਲੁਟਿਆਜਾਰਿਹਾਹੈ, ਮਨਦੇਪਿੱਛੇਤੁਰਨਵਾਲੇਬੰਦੇਨੂੰਇਹਸਮਝਨਹੀਂਪੈਂਦੀ।
جگتُ مُسےَ انّم٘رِتُ لُٹیِئےَ منمُکھ بوُجھ ن پاءِ ॥
سارا عالم اور اسکی مخلوق لٹ ہو رہی ہے۔۔ اور اسکی آب حیات زندگی کی لوٹ ہو رہی ہے اور اسکے نیک اوصاف اور نیکیان لٹ رہی ہیں مگر مرید من خودی پسند کو سمجھ نہیں آرہی سمجھتا نہیں۔

ਵਿਣੁਨਾਵੈਨਾਲਿਨਚਲਸੀਜਾਸੀਜਨਮੁਗਵਾਇ॥
vin naavai naal na chalsee jaasee janam gavaa-ay.
Without the Name, nothing will go along with him; he wastes his life, and departs.
(A self-conceited person doesn’t understand that except God’s) Name nothing would accompany one (after death, therefore) one would depart from here wasting one’s (human) life.
ਪ੍ਰਭੂਦੇਨਾਮਤੋਂਬਿਨਾ (ਕੋਈਹੋਰਸ਼ੈਮਨੁੱਖਦੇ) ਨਾਲਨਹੀਂਜਾਇਗੀ (ਸੋ, ‘ਨਾਮ’ ਤੋਂਭੁੱਲਾਹੋਇਆਮਨੁੱਖਆਪਣਾਜਨਮਅਜਾਈਂਗਵਾਕੇਜਾਇਗਾ।
ۄِنھُ ناۄےَ نالِ ن چلسیِ جاسیِ جنمُ گۄاءِ ॥
الہٰی نام ست سچ حق وحقیقت کے ساتھ نہیں جاتا کچھ بھی ساتھ لہذا انسان کی زندگی بیکار چلی جاتی ہے

ਗੁਰਮਤੀਜਾਗੇਤਿਨ੍ਹ੍ਹੀਘਰੁਰਖਿਆਦੂਤਾਕਾਕਿਛੁਨਵਸਾਇ॥੮॥
gurmatee jaagay tinHee ghar rakhi-aa dootaa kaa kichh na vasaa-ay. ||8||
Those who follow the Guru’s Teachings and remain awake and aware, preserve and protect the home of their heart; demons have no power against them. ||8||
Trough Guru’s instruction they who have remained awake (from the slumber of worldly attachments), have kept the home (of their heart) safe and the demons (of worldly sins) cannot do them any harm. ||8||
ਜਿਹੜੇਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੀਮੱਤਲੈਕੇ (ਮਾਇਆਦੇਮੋਹਦੀਨੀਂਦਵਿਚੋਂ) ਜਾਗਪੈਂਦੇਹਨਉਹਆਪਣਾਘਰ (ਭਾਵ, ਆਪਣਾਸਰੀਰ, ਵਿਕਾਰਾਂਤੋਂ) ਬਚਾਰੱਖਦੇਹਨ, ਇਹਨਾਂਦੂਤਾਂ (ਵਿਕਾਰਾਂ) ਦਾਉਹਨਾਂਉਤੇਕੋਈਜ਼ੋਰਨਹੀਂਚਲਦਾ॥੮॥
گُرمتیِ جاگے تِن٘ہ٘ہیِ گھرُ رکھِیا دوُتا کا کِچھُ ن ۄساءِ ॥੮॥
۔ گرمتی جاگے ۔ سبق ۔ مرشد سے جو بیدار ہوئے ۔ گھر رکھیا۔ اپنا آپ برائیوں عیبوں سے بچائیا ہے ۔
۔ جنہوں نے سبق مرشد سے بیدار کیا اور روحانی واخلاقی پاکیزگی حاصل کی عبیوں کا ان پر کوئی اثر نہیں پڑتا۔

ਸਲੋਕਮਃ੩॥
salok mehlaa 3.
Shalok, Third Mehl:
سلوک مਃ੩॥

ਬਾਬੀਹਾਨਾਬਿਲਲਾਇਨਾਤਰਸਾਇਏਹੁਮਨੁਖਸਮਕਾਹੁਕਮੁਮੰਨਿ॥
baabeehaa naa billaa-ay naa tarsaa-ay ayhu man khasam kaa hukam man.
O rainbird, do not cry out. Do not let this mind of yours be so thirsty for a drop of water. Obey the Hukam, the Command of your Lord and Master,
O’ Papeeha (like seeker), don’t cry. Advise your mind to obey God’s command. Because O’ Nanak, by obeying the will (of God),
ਹੇਪਪੀਹੇ! ਨਾਹਵਿਲਕ, ਆਪਣਾਮਨਨਾਹਤਰਸਾਤੇਮਾਲਕਦਾਹੁਕਮਮੰਨ (ਉਸਦੇਹੁਕਮਵਿਚਹੀਵਰਖਾਹੋਵੇਗੀ)।
بابیِہا نا بِللاءِ نا ترساءِ ایہُ منُ کھسم کا ہُکمُ منّنِ ॥
بللائے ۔ آہ وزاری۔ ترسائے ۔ مرجھائے ۔غمگین ۔ حکم من۔ فرمانبردار ہو
اے پپیہے مراد انسان آہ وزاری نہ کر نہ ڈل ڈگمگا خدا کی رضا میں راضی رہ فرمانبرداری کر ۔

ਨਾਨਕਹੁਕਮਿਮੰਨਿਐਤਿਖਉਤਰੈਚੜੈਚਵਗਲਿਵੰਨੁ॥੧॥
naanak hukam mani-ai tikh utrai charhai chavgal vann. ||1||
and your thirst shall be quenched. Your love for Him shall increase four-fold. ||1||
our thirst (for worldly possessions) is erased (and our mind feels so happy that) our love (for God) multiplies fourfold. ||1||
ਹੇਨਾਨਕ! ਪ੍ਰਭੂਦੀਰਜ਼ਾਵਿਚਟੁਰਿਆਂਹੀ (ਮਾਇਆਦੀਤ੍ਰੇਹਮਿਟਦੀਹੈਤੇਚੌਗੁਣਾਰੰਗਚੜ੍ਹਦਾਹੈ (ਭਾਵ, ਮਨਪੂਰੇਤੌਰਤੇਖਿੜਦਾਹੈ) ॥੧॥
نانک ہُکمِ منّنِئےَ تِکھ اُترےَ چڑےَ چۄگلِ ۄنّنُ ॥੧॥
۔ تکھ اترے پیاس بجھتی ہے ۔ چوگن ون۔ سرخرورئی ۔
اے نانک فرمان برداری سے خواہشات کی پیاس بجھتی ہے اور سرخروئی حاصل ہوتی ہے ۔

ਮਃ੩॥
mehlaa 3.
Third Mehl:
مਃ੩॥

ਬਾਬੀਹਾਜਲਮਹਿਤੇਰਾਵਾਸੁਹੈਜਲਹੀਮਾਹਿਫਿਰਾਹਿ॥
baabeehaa jal meh tayraa vaas hai jal hee maahi firaahi.
O rainbird, your place is in the water; you move around in the water.
O’ Pappeeha, your abode is in water and you move around in water (of God’s Name.
ਹੇਪਪੀਹੇ! ਪਾਣੀਵਿਚਤੂੰਵੱਸਦਾਹੈਂ, ਪਾਣੀਵਿਚਹੀਤੂੰਤੁਰਦਾਫਿਰਦਾਹੈਂ (ਭਾਵ, ਹੇਜੀਵ! ਸਰਬਵਿਆਪਕਹਰੀਵਿਚਹੀਤੂੰਜੀਉਂਦਾਵੱਸਦਾਹੈ)
بابیِہا جل مہِ تیرا ۄاسُ ہےَ جل ہیِ ماہِ پھِراہِ ॥
بابیہا ۔ انسان کو باسہے کی تشبیح دیکر مخاطت کیا ہے اس جل مراد۔

ਜਲਕੀਸਾਰਨਜਾਣਹੀਤਾਂਤੂੰਕੂਕਣਪਾਹਿ॥
jal kee saar na jaanhee taaNtooN kookan paahi.
But you do not appreciate the water, and so you cry out.
However) you do not know the worth of this water, that is why you are wailing.
ਪਰਉਸਪਾਣੀਦੀਤੈਨੂੰਕਦਰਨਹੀਂ, ਇਸਵਾਸਤੇਤੂੰਵਿਲਕਰਿਹਾਹੈਂ।
جل کیِ سار ن جانھہیِ تاں توُنّ کوُکنھ پاہِ ॥
عالم یا دنیا میں ہرہائش پذید ہے اسی میں بو دوباش اور کاروبار کرتا ہے اور اسکی تجھے خبر نہیں اور آہ وزاری کر رہا ہے ۔

ਜਲਥਲਚਹੁਦਿਸਿਵਰਸਦਾਖਾਲੀਕੋਥਾਉਨਾਹਿ॥
jal thal chahu dis varasdaa khaalee ko thaa-o naahi.
In the water and on the land, it rains down in the ten directions. No place is left dry.
This water is raining over the earth in all the four directions and no place is bereft of this rain.
ਚਹੁੰਪਾਸੀਂਹੀਜਲਾਂਵਿਚਥਲਾਂਵਿਚਵਰਖਾਹੋਰਹੀਹੈਕੋਈਥਾਂਐਸਾਨਹੀਂਜਿਥੇਵਰਖਾਨਹੀਂਹੁੰਦੀ;
جل تھل چہُ دِسِ ۄرسدا کھالیِ کو تھاءُ ناہِ ॥
پانی اور زمین ہر جگہ برس رہا ہے اس سے کوئی جگہ خالی نہیں

ਏਤੈਜਲਿਵਰਸਦੈਤਿਖਮਰਹਿਭਾਗਤਿਨਾਕੇਨਾਹਿ॥
aytai jal varsadai tikh mareh bhaag tinaa kay naahi.
With so much rain, those who are die of thirst are very unfortunate.
If in spite of so much rain some die in thirst, (then it means that) they don’t have good fortune.
ਇਤਨੀਵਰਖਾਹੁੰਦਿਆਂਜੋਤਿਹਾਏਮਰਰਹੇਹਨਉਹਨਾਂਦੇ (ਚੰਗੇ) ਭਾਗਨਹੀਂਹਨ।
ایتےَ جلِ ۄرسدےَ تِکھ مرہِ بھاگ تِنا کے ناہِ ॥
۔ اتنی بارش ہو نے کے باوجود تو پیاسا ہے لہذا تیری قسمت میں ہیں

ਨਾਨਕਗੁਰਮੁਖਿਤਿਨਸੋਝੀਪਈਜਿਨਵਸਿਆਮਨਮਾਹਿ॥੨॥
naanak gurmukhtin sojhee pa-ee jin vasi-aa man maahi. ||2||
O Nanak, the Gurmukhs understand; the Lord abides within their minds. ||2||
O’ Nanak, by Guru’s grace only those persons have realized (this thing) in whose mind (God) has come to reside. ||2||
ਹੇਨਾਨਕ! ਗੁਰੂਦੀਰਾਹੀਂਜਿਨ੍ਹਾਂਦੇਹਿਰਦੇਵਿਚਪ੍ਰਭੂਆਵੱਸਦਾਹੈਉਹਨਾਂਨੂੰਇਹਸੂਝਆਉਂਦੀਹੈ (ਕਿਪ੍ਰਭੂਹਰਥਾਂਵੱਸਦਾਹੈ) ॥੨॥
نانک گُرمُکھِ تِن سوجھیِ پئیِ جِن ۄسِیا من ماہِ ॥੨॥
۔ اے نانک ان جن کو سمجھ آگئی جنکے دل میں بس گیا۔

ਪਉੜੀ॥
pa-orhee.
Pauree:
پئُڑیِ ॥

ਨਾਥਜਤੀਸਿਧਪੀਰਕਿਨੈਅੰਤੁਨਪਾਇਆ॥
naath jatee siDh peer kinai ant na paa-i-aa.
The Yogic Masters, celibates, Siddhas and spiritual teachers – none of them has found the limits of the Lord.
(O’ God), none of the great yogis, celibates, adepts, or peers (muslim holy men) could find Your limit.
(ਹੇਪ੍ਰਭੂ!) ਨਾਥ, ਜਤੀ, ਪੁੱਗੇਹੋਏਜੋਗੀ, ਪੀਰ (ਕਈਹੋਗੁਜ਼ਰੇਹਨ, ਪਰ,) ਕਿਸੇਨੇਤੇਰਾਅੰਤਨਹੀਂਪਾਇਆ (ਭਾਵ, ਤੂੰਕਿਹੋਜਿਹਾਹੈਂਕਦੋਂਤੋਂਹੈਂ, ਕੇਡਾਹੈਂ-ਇਹਗੱਲਕੋਈਨਹੀਂਦੱਸਸਕਿਆ, ਕਈਜਤਨਕਰਚੁਕੇ)।
ناتھ جتیِ سِدھ پیِر کِنےَ انّتُ ن پائِیا ॥
ناتھ ۔ جوگی ۔ جتی ۔ جنکی شہوت پر ضبط ہے ۔ سدھ ۔ جسنے زندگی کا راہ راست حاصل کر لیا۔ پیر۔ روحانی بزرگ۔ ۔ انت ۔ آخر
کتنے ہی جوگی خدا رسیدہ شہوت پر ضبطرکھنے والے ولی اللہ مذہبی رہنما ہوئے کسی نے تیرے راز کو سمجھ نہیں آئی ۔ کسی کو تیری قدرومنزلت کی سمجھ نہیں آئی

ਗੁਰਮੁਖਿਨਾਮੁਧਿਆਇਤੁਝੈਸਮਾਇਆ॥
gurmukh naam Dhi-aa-ay tujhai samaa-i-aa.
The Gurmukhs meditate on the Naam, and merge in You, O Lord.
(Therefore instead of wasting time on such fruitless efforts), the Guru’s followers remain absorbed (in meditating on Your Name.
ਗੁਰੂਦੀਸਿੱਖਿਆਉਤੇਤੁਰਨਵਾਲੇਮਨੁੱਖ (ਅਜੇਹੇਨਿਸਫਲਉੱਦਮਛੱਡਕੇ, ਕੇਵਲਤੇਰਾ) ਨਾਮਸਿਮਰਕੇਤੇਰੇ (ਚਰਨਾਂਵਿਚ) ਲੀਨਰਹਿੰਦੇਹਨ।
گُرمُکھِ نامُ دھِیاءِ تُجھےَ سمائِیا ॥
۔ گورمکھ ۔ مرید مرشد۔ نام دھیائے ۔ نام میں توجہ دی ۔ تجھے سمائیا ۔ تجھ میں محو ومجذوب ہوا
۔ مریدان مرشد الہٰی نام ست سچ حق وحقیقت میں دھیان لگا کر اپنا کر تجھ میں ہی محو ومجذوب ہو جاتے ہیں۔

ਜੁਗਛਤੀਹਗੁਬਾਰੁਤਿਸਹੀਭਾਇਆ॥
jug chhateeh bubaar tis hee bhaa-i-aa.
For thirty-six ages, God remained in utter darkness, as He pleased.
They realize that if) for thirty-six Yugas (many eons), there was pitch darkness (of ignorance), then this is what pleased Him.
ਇਹਗੱਲਉਸਪ੍ਰਭੂਨੂੰਇਉਂਹੀਚੰਗੀਲੱਗੀਹੈਕਿਅਨੇਕਾਂਜੁਗਹਨੇਰਾਹੀਹਨੇਰਾਸੀ (ਭਾਵ, ਇਹਕਿਹਾਨਹੀਂਜਾਸਕਦਾਕਿਜਦੋਂਜਗਤ-ਰਚਨਾਨਹੀਂਸੀਹੋਈਤਦੋਂਕੀਹਸੀ);
جُگ چھتیِہ گُبارُ تِس ہیِ بھائِیا ॥
۔ جگ چھتیہ ۔لاکھوں سال ۔ غبار۔ اندھیرا۔ بھائیا۔ اچھا لگا۔
چھتیس جگ مراد لاکھوں سال اس دنیا میں

ਜਲਾਬਿੰਬੁਅਸਰਾਲੁਤਿਨੈਵਰਤਾਇਆ॥
jalaa bimb asraal tinai vartaa-i-aa.
The vast expanse of water swirled around.
(However one thing is sure) that it was He who spread the dreadful waters (in the form of mighty oceans) all around.
ਫਿਰਭਿਆਨਕਜਲਹੀਜਲ-ਇਹਖੇਡਭੀਉਸੇਨੇਵਰਤਾਈ;
جلا بِنّبُ اسرالُ تِنےَ ۄرتائِیا ॥
جلا ہنب اسرال ۔ خوفناک پانی ہی پانی
اندھیرا اور پانی تھاہر جگہ۔

ਨੀਲੁਅਨੀਲੁਅਗੰਮੁਸਰਜੀਤੁਸਬਾਇਆ॥
neel aneel agamm sarjeet sabaa-i-aa.
The Creator of all is Infinite, Endless and Inaccessible.
He, the Creator of all, is limitless, incomprehensible, and immortal.
ਤੇ, ਉਹਸਦਾਜੀਉਂਦਾਰਹਿਣਵਾਲਾਪ੍ਰਭੂਆਪਬੇਅੰਤਹੀਬੇਅੰਤਅਤੇਪਹੁੰਚਤੋਂਪਰੇ-
نیِلُ انیِلُ اگنّمُ سرجیِتُ سبائِیا ॥
۔ نیل انیل۔ بیشمار ۔ از خد بیشمار۔ اگم ۔ انسانی عقل و ہوش سے باہر ۔ سر چیت ۔ سازندہ ۔سبائیا۔ سب کو پیدا کیا
اے اعداد و شمار سے باہر لا محدود ہستی اے انسانی عقل و ہوش سے بلند و بالا

ਅਗਨਿਉਪਾਈਵਾਦੁਭੁਖਤਿਹਾਇਆ॥
agan upaa-ee vaadbhukhtihaa-i-aa.
He formed fire and conflict, hunger and thirst.
(After creating the world, He infused the creatures with the) fire (of desire), conflicts, hunger and thirst (for worldly things.
(ਜਦੋਂਉਸਨੇਜਗਤ-ਰਚਨਾਕਰਦਿੱਤੀ, ਤਦੋਂ) ਤ੍ਰਿਸ਼ਨਾਦੀਅੱਗ, ਵਾਦ-ਵਿਵਾਦਤੇਭੁੱਖਤ੍ਰਿਹਭੀਉਸਨੇਆਪਹੀਪੈਦਾਕਰਦਿੱਤੇ।
اگنِ اُپائیِ ۄادُ بھُکھ تِہائِیا ॥
۔ اگن اپائی وادبھکھ تہائیا۔ بھوک پیاس کے جھگڑے کی اگ پیدا کی ۔
تو نے سارے عالم کو پیدا کیا اور جانداروں میں خواہشات کی آگ اور بھوک پیاس پیدا کی

ਦੁਨੀਆਕੈਸਿਰਿਕਾਲੁਦੂਜਾਭਾਇਆ॥
dunee-aa kai sir kaal doojaa bhaa-i-aa.
Death hangs over the heads of the people of the world, in the love of duality.
He also) subjected the world to death and duality (or love for worldly wealth, instead of God.
ਦੁਨੀਆ (ਭਾਵ, ਜੀਵਾਂ) ਦੇਸਿਰਉਤੇਮੌਤ (ਦਾਡਰਭੀਉਸੇਨੇਪੈਦਾਕੀਤਾਹੈ; ਕਿਉਂਕਿਇਹਨਾਂਨੂੰ) ਇਹਦੂਜਾ (ਭਾਵ, ਪ੍ਰਭੂਨੂੰਛੱਡਕੇਇਹਦਿੱਸਦਾਜਗਤ) ਪਿਆਰਾਲੱਗਰਿਹਾਹੈ।
دُنیِیا کےَ سِرِ کالُ دوُجا بھائِیا ॥
۔ کال۔ موت۔ دوجا بھائیا۔ جنکو دویت سے پیار ہے ۔
اور ان مخلوقات سر پر موت بنائی جنہوں نے خدا کے علاوہ دوسروں سے محبت کی ۔ خدا سے منکر ہوکر قائنات قدرت سے محبت کی ۔

ਰਖੈਰਖਣਹਾਰੁਜਿਨਿਸਬਦੁਬੁਝਾਇਆ॥੯॥
rakhai rakhanhaar jin sabad bujhaa-i-aa. ||9||
The Savior Lord saves those who realize the Word of the Shabad. ||9||
However whom God) has given the right understanding (through the Guru, they have realized that it is) the savior (God) who saves us (from all pains). ||9||
ਪਰ, ਰੱਖਣਦੇਸਮਰੱਥਪ੍ਰਭੂਜਿਸਨੇ (ਗੁਰੂਦੀਰਾਹੀਂ) ਸ਼ਬਦਦੀਸੂਝਬਖ਼ਸ਼ੀਹੈ (ਇਹਨਾਂਅਗਨਿ, ਵਾਦ, ਭੁਖ, ਤ੍ਰਿਹਤੇਕਾਲਆਦਿਕਤੋਂ) ਰੱਖਦਾਭੀਆਪਹੀਹੈ॥੯॥
رکھےَ رکھنھہارُ جِنِ سبدُ بُجھائِیا ॥੯॥
رکھنہار۔ جسے حفاطت کی توفیق ہے ۔ سبد بجھائیا۔ کلام سمجھائیا۔
مگر حفاظت کی توفیق رکھنے والے خدا نے کلام کے ذریعے سمجھائیا اور خود حفاظت کی ۔

ਸਲੋਕਮਃ੩॥
salok mehlaa 3.
Shalok, Third Mehl:
سلوک مਃ੩॥

ਇਹੁਜਲੁਸਭਤੈਵਰਸਦਾਵਰਸੈਭਾਇਸੁਭਾਇ॥
ih jal sabhtai varasdaa varsai bhaa-ay subhaa-ay.
This rain pours down on all; it rains down in accordance with God’s Loving Will.
(O’ my friends), this water (of God’s Name) rains all over in its natural state and character.
(ਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮ-ਰੂਪ) ਇਹਜਲ (ਭਾਵ, ਮੀਂਹ) ਹਰਥਾਂਵੱਸਰਿਹਾਹੈਤੇਵਰ੍ਹਦਾਭੀਹੈਪ੍ਰੇਮਨਾਲਤੇਆਪਣੀਮੌਜਨਾਲ (ਭਾਵ, ਕਿਸੇਵਿਤਕਰੇਨਾਲਨਹੀਂ),
اِہُ جلُ سبھ تےَ ۄرسدا ۄرسےَ بھاءِ سُبھاءِ ॥
سبھ تے ۔ ہر جگہ۔ سب کے اوپر۔ بھائے ۔ پریم پیار سے ۔ سبھائے ۔ عادت کی مطابق
الہٰی نام ست سچ حق وحقیقت کی ہر جگہ برابر بارش ہوتی ہے

ਸੇਬਿਰਖਾਹਰੀਆਵਲੇਜੋਗੁਰਮੁਖਿਰਹੇਸਮਾਇ॥
say birkhaa haree-aavlay jo gurmukh rahay samaa-ay.
Those trees become green and lush, which remain immersed in the Guru’s Word.
But only those (human) trees become green (with joy), who by Guru’s grace remain absorbed (in this rain of God’s Name).
ਪਰ, ਕੇਵਲਉਹੀ (ਜੀਵ-ਰੂਪ) ਰੁੱਖਹਰੇਹੁੰਦੇਹਨਜੋਗੁਰੂਦੇਸਨਮੁਖਹੋਕੇ (ਇਸ ‘ਨਾਮ’ ਵਰਖਾਵਿਚ) ਲੀਨਰਹਿੰਦੇਹਨ।
سے بِرکھا ہریِیاۄلے جو گُرمُکھِ رہے سماءِ ॥
۔ برکھا۔ شجر ۔ مراد انسان۔ ہر یاوے ۔ خوش قسمت۔ سمائے۔ ۔ محو ۔ ندری ۔ الہٰی کرم و عنایت سے ۔
مگر وہی فائدہ اسکا اٹھاتے ہیں جو مرید مرشد ہوکر اس میں دھیان لگاتے اور اپناتے ہیں

ਨਾਨਕਨਦਰੀਸੁਖੁਹੋਇਏਨਾਜੰਤਾਕਾਦੁਖੁਜਾਇ॥੧॥
naanak nadree sukh ho-ay aynaa jantaa kaa dukh jaa-ay. ||1||
O Nanak, by His Grace, there is peace; the pain of these creatures is gone. ||1||
O’ Nanak, by God’s grace peace wells up (in their minds), and the pain of these creatures goes away. ||1||
ਹੇਨਾਨਕ! ਪ੍ਰਭੂਦੀਮਿਹਰਦੀਨਜ਼ਰਨਾਲਸੁਖਪੈਦਾਹੁੰਦਾਹੈਤੇਇਹਨਾਂਜੀਵਾਂਦਾਦੁੱਖਦੂਰਹੁੰਦਾਹੈ॥੧॥
نانک ندریِ سُکھُ ہوءِ اینا جنّتا کا دُکھُ جاءِ ॥੧॥
اے نانک۔ جن پر خدا کی رحمت عنایت اور شفقت ہوتی ہے وہ آرام و آسائش پاتے ہیں اور مصیبت مٹ جاتی ہے ۔

ਮਃ੩॥
mehlaa 3.
Third Mehl:
مਃ੩॥

ਭਿੰਨੀਰੈਣਿਚਮਕਿਆਵੁਠਾਛਹਬਰਲਾਇ॥
bhinnee rain chamki-aa vuthaa chhahbar laa-ay.
The night is wet with dew; lightning flashes, and the rain pours down in torrents.
If God so wills, the lightening flashes on a dewy night, (the cloud) bursts in torrents
(ਤਦੋਂ) ਸੁਹਾਵਣੀਰਾਤੇ (ਬੱਦਲ) ਚਮਕਦਾਹੈਤੇਝੜੀਲਾਕੇਵਰ੍ਹਦਾਹੈ,
بھِنّنیِ ریَنھِ چمکِیا ۄُٹھا چھہبر لاءِ ॥
بھنی رین ۔ خوش قسمت رات ۔ چمکیا ۔ روشی ہوئی ۔ وٹھا ۔ برسیا۔ چھہیر ۔ موسلادار
جب الہٰی کرم و عنایت ہوتی ہے تو زندگی پر نور ہو جاتی ہے جس کی رحمت سے بیشمار نعمتیں میسئر ہوتی ہیں

ਜਿਤੁਵੁਠੈਅਨੁਧਨੁਬਹੁਤੁਊਪਜੈਜਾਂਸਹੁਕਰੇਰਜਾਇ॥
jit vuthai an Dhan bahut oopjai jaaN saho karay rajaa-ay.
Food and wealth are produced in abundance when it rains, if it is the Will of God.
and wealth (in the form of crops) grows from this rainfall.
ਜਦੋਂਪ੍ਰਭੂਨੂੰਭਾਉਂਦਾਹੈ।ਇਸਦੇਵੱਸਣਨਾਲਬੜਾਅੰਨ (-ਰੂਪ) ਧਨਪੈਦਾਹੁੰਦਾਹੈ।
جِتُ ۄُٹھےَ انُ دھنُ بہُتُ اوُپجےَ جاں سہُ کرے رجاءِ ॥
۔ سوہ ۔ مالک۔ رجائے ۔ رضا
جب بارش ہوتی ہے تو خوراک اور دولت وافر مقدار میں پیدا ہوتی ہے ، اگر یہ خدا کی مرضی ہے۔اور اس بارش سے دولت بڑھتی ہے۔

ਜਿਤੁਖਾਧੈਮਨੁਤ੍ਰਿਪਤੀਐਜੀਆਂਜੁਗਤਿਸਮਾਇ॥
jitkhaaDhai man taripat-ee-ai jee-aaN jugat samaa-ay.
Consuming it, the minds of His creatures are satisfied, and they adopt the lifestyle of the way.
On consuming (this wealth) one’s mind is satiated and the creatures know the way to survive.
ਇਸਧਨਦੇਵਰਤਣਨਾਲਮਨਰੱਜਦਾਹੈਤੇਜੀਵਾਂਵਿਚਜੀਊਣਦੀਜੁਗਤੀਆਉਂਦੀਹੈ (ਭਾਵ, ਅੰਨਖਾਧਿਆਂਜੀਵਜੀਊਂਦੇਹਨ)।
جِتُ کھادھےَ منُ ت٘رِپتیِئےَ جیِیا جُگتِ سماءِ ॥
۔ ترتپتیئے ۔ تسلی۔ جگت۔ طریقہ ۔ سمائے ۔ ملاپ ۔
جس کے کھانے سے دل کو تسکین حاصل ہوتی ہے اور طرز زندگی کا پتہ چلتا ہے

ਇਹੁਧਨੁਕਰਤੇਕਾਖੇਲੁਹੈਕਦੇਆਵੈਕਦੇਜਾਇ॥
ih Dhan kartay kaa khayl hai kaday aavai kaday jaa-ay.
This wealth is the play of the Creator Lord. Sometimes it comes, and sometimes it goes.
However this wealth is just a play of the Creator, some times it comes and some times it goes away.
ਪਰ, ਇਹ (ਅੰਨ-ਰੂਪ) ਧਨਤਾਂਕਰਤਾਰਦਾਇਕਤਮਾਸ਼ਾਹੈਜੋਕਦੇਪੈਦਾਹੁੰਦਾਹੈਕਦੇਨਾਸਹੋਜਾਂਦਾਹੈ।
اِہُ دھنُ کرتے کا کھیلُ ہےَ کدے آۄےَ کدے جاءِ ॥
یہ دولت خدا کا کھیل ہے کبھی آتا ہے اور کبھی چلا جاتا ہے

ਗਿਆਨੀਆਕਾਧਨੁਨਾਮੁਹੈਸਦਹੀਰਹੈਸਮਾਇ॥
gi-aanee-aa kaa Dhan naam hai sad hee rahai samaa-ay.
The Naam is the wealth of the spiritually wise. It is permeating and pervading forever.
For the (divinely) wise, (the true) wealth is (God’s) Name, in which they always remain absorbed.
ਪਰਮਾਤਮਾਨਾਲਡੂੰਘੀਸਾਂਝਰੱਖਣਵਾਲੇਬੰਦਿਆਂਲਈਪ੍ਰਭੂਦਾਨਾਮਹੀਧਨਹੈਜੋਸਦਾਟਿਕਿਆਰਹਿੰਦਾਹੈ।
گِیانیِیا کا دھنُ نامُ ہےَ سد ہیِ رہےَ سماءِ ॥
۔ گیانیاں ۔ دانمشنداں ۔ عالموں ۔
عالموں دانشمندوں کے لئے دولت اور سرمایہ الہٰی نام ست سچ اور حق و حقیقت ہے جو ہمیشہ قائم دائم رہتا ہے ۔

ਨਾਨਕਜਿਨਕਉਨਦਰਿਕਰੇਤਾਂਇਹੁਧਨੁਪਲੈਪਾਇ॥੨॥
naanak jin ka-o nadar karay taaN ih Dhan palai paa-ay. ||2||
O Nanak, those who are blessed with His Glance of Grace receive this wealth. ||2||
O’ Nanak, He blesses those with this wealth on whom He casts His glance of grace. ||2||
ਹੇਨਾਨਕ! ਜਿਨ੍ਹਾਂਉਤੇਪ੍ਰਭੂਮਿਹਰਦੀਨਜ਼ਰਕਰਦਾਹੈਉਹਨਾਂਨੂੰਇਹਧਨਬਖ਼ਸ਼ਦਾਹੈ॥੨॥
نانک جِن کءُ ندرِ کرے تاں اِہُ دھنُ پلےَ پاءِ ॥੨॥
ندر ۔ نگاہ۔ شفقت۔ پلے ۔ دامن ۔
اے ناک۔ الہٰی نطر عنایت و شفقت سے یہ دولت نصیب ہوتی ہے ۔

ਪਉੜੀ॥
pa-orhee.
Pauree:
پئُڑیِ ॥

ਆਪਿਕਰਾਏਕਰੇਆਪਿਹਉਕੈਸਿਉਕਰੀਪੁਕਾਰ॥
aap karaa-ay karay aap ha-o kai si-o karee pukaar.
He Himself does, and causes all to be done. Unto whom can I complain?
(O’ my friends, when I know that it is God who) Himself does and gets every thing done (from the creatures), then before whom can I complain?
ਪ੍ਰਭੂ (ਸਭਕੁਝ) ਆਪਹੀਕਰਰਿਹਾਹੈਤੇ (ਜੀਵਾਂਪਾਸੋਂ) ਆਪਹੀਕਰਾਰਿਹਾਹੈ (ਸੋ, ਇਸਅਗਨਿ, ਵਾਦੁ, ਭੁੱਖ, ਤ੍ਰੇਹ, ਕਾਲਆਦਿਕਬਾਰੇ) ਕਿਸੇਹੋਰਪਾਸਫ਼ਰਿਆਦਨਹੀਂਕੀਤੀਜਾਸਕਦੀ।
آپِ کراۓ کرے آپِ ہءُ کےَ سِءُ کریِ پُکار ॥
کے سیؤ ۔ کس سے ۔ پکار۔ فریاد۔ شکایت ۔
خدا جو کچھ ہوتا ہے خود کرتا ہے اور خود ہی کرواتا ہے ۔ تب اسکے خلاف کونسی ہستی ہے جس کے یا فریاد وشکایت کریں

ਆਪੇਲੇਖਾਮੰਗਸੀਆਪਿਕਰਾਏਕਾਰ॥
aapay laykhaa mangsee aap karaa-ay kaar.
He Himself calls the mortal beings to account; He Himself causes them to act.
He on His own would ask for the accounts of deeds, which He is making us do.
(ਜੀਵਾਂਪਾਸੋਂ) ਆਪਹੀ (ਭੁੱਖਤ੍ਰਿਹਆਦਿਕਵਾਲੇ) ਕੰਮਕਰਾਰਿਹਾਹੈਤੇ (ਇਹਨਾਂਕੀਤੇਕੰਮਾਂਦਾ) ਲੇਖਾਭੀਆਪਹੀਮੰਗਦਾਹੈ।
آپے لیکھا منّگسیِ آپِ کراۓ کار ॥
۔ وہ خود ہی کروا کے خود ہی اسکا حساب مانگتا ہے

ਜੋਤਿਸੁਭਾਵੈਸੋਥੀਐਹੁਕਮੁਕਰੇਗਾਵਾਰੁ॥
jo tis bhaavai so thee-ai hukam karay gaavaar.
Whatever pleases Him happens. Only a fool issues commands.
Whatever pleases Him that happens, (so only) a fool would order (Him to do any thing).
ਮੂਰਖਜੀਵ (ਐਵੇਂਹੀ) ਹੈਂਕੜਵਿਖਾਂਦਾਹੈ (ਅਸਲਵਿਚ) ਉਹੀਕੁਝਹੁੰਦਾਹੈਜੋਉਸਪ੍ਰਭੂਨੂੰਚੰਗਾਲੱਗਦਾਹੈ।
جو تِسُ بھاۄےَ سو تھیِئےَ ہُکمُ کرے گاۄارُ ॥
بھاوے سوتھیئے ۔ جو چاہتا ہے ہوتا ہے ۔ گاوار۔ جاہل۔
۔ جو خدا چاہتا ہے وہی ہوتا ہے ۔ مگر جاہل انسان بیفائدہ حکم چلاتا ایسے ہونا چاہیے ایسے نہ ہونا چاہیے ۔

ਆਪਿਛਡਾਏਛੁਟੀਐਆਪੇਬਖਸਣਹਾਰੁ॥
aap chhadaa-ay chhutee-ai aapay bakhsanhaar.
He Himself saves and redeems; He Himself is the Forgiver.
Only when He Himself gets us emancipated, we are emancipated and He Himself has the power to forgive.
(ਇਹਨਾਂਅਗਨਿਭੁੱਖਆਦਿਕਾਂਤੋਂ) ਜੇਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਬਚਾਏਤਾਂਬਚੀਦਾਹੈ, ਇਹਬਖ਼ਸ਼ਸ਼ਉਹਆਪਹੀਕਰਨਵਾਲਾਹੈ।
آپِ چھڈاۓ چھُٹیِئےَ آپے بکھسنھہارُ ॥
جب خدا نجات دلائے تب نجات نصیب ہوتی ہے جب بخشنے کی توفیق رکھنے والا خدا بخشش کرتا ہے

ਆਪੇਵੇਖੈਸੁਣੇਆਪਿਸਭਸੈਦੇਆਧਾਰੁ॥
aapay vaykhai sunay aap sabhsai day aaDhaar.
He Himself sees, and He Himself hears; He gives His Support to all.
He Himself watches and listens (to our prayers) and provides sustenance to all.
ਜੀਵਾਂਦੀਸੰਭਾਲਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਕਰਦਾਹੈ, ਆਪਹੀ (ਜੀਵਾਂਦੀਆਂਅਰਦਾਸਾਂ) ਸੁਣਦਾਹੈਤੇਹਰੇਕਜੀਵਨੂੰਆਸਰਾਦੇਂਦਾਹੈ।
آپے ۄیکھےَ سُنھے آپِ سبھسےَ دے آدھارُ ॥
ادھار۔ آسرا۔
وہ خود دیکھتا ہے خود سنتا ہے۔ خود ہی سب کو آسرا دیتا ہے ۔

ਸਭਮਹਿਏਕੁਵਰਤਦਾਸਿਰਿਸਿਰਿਕਰੇਬੀਚਾਰੁ॥
sabh meh ayk varatdaa sir sir karay beechaar.
He alone is pervading and permeating all; He considers each and every one.
The one (God) pervades in all and He takes care of each and every one.
ਸਭਜੀਵਾਂਵਿਚਪ੍ਰਭੂਆਪਹੀਮੌਜੂਦਹੈਤੇਹਰੇਕਜੀਵਦਾਧਿਆਨਰੱਖਦਾਹੈ।
سبھ مہِ ایکُ ۄرتدا سِرِ سِرِ کرے بیِچارُ ॥
سر سر۔ ہر ایک کی علیحدہ علیحدہ ۔
سب میں خود ہی بس کر سب کا علیحدہ علیحدہ دھیان رکھتا ہے ۔