Urdu-Raw-Page-1078

ਜਿਸੁਨਾਮੈਕਉਤਰਸਹਿਬਹੁਦੇਵਾ॥
jis naamai ka-o tarseh baho dayvaa.
That God whose Name is craved by many gods, ਜਿਸਪਰਮਾਤਮਾਦੇਨਾਮਨੂੰਅਨੇਕਾਂਦੇਵਤੇਤਰਸਦੇਹਨ,
جِسُ نامےَ کءُ ترسہِ بہُ دیۄا ॥
دیوا۔ دیوتے ۔ فرشتے ۔
جس کی تمام عابدوعاشقان خدا خدمت کرتے ہیں۔
ਸਗਲਭਗਤਜਾਕੀਕਰਦੇਸੇਵਾ॥
sagal bhagat jaa kee karday sayvaa.
whose devotional worship is performed by all the devotees, ਸਾਰੇਹੀਭਗਤਜਿਸਪ੍ਰਭੂਦੀਸੇਵਾ-ਭਗਤੀਕਰਦੇਹਨ,
سگل بھگت جا کیِ کردے سیۄا ॥
سگل۔ سارے ۔
جو غریبوں ناتوانوںکے دکھ درد مٹانے والا ہے ۔
ਅਨਾਥਾਨਾਥੁਦੀਨਦੁਖਭੰਜਨੁਸੋਗੁਰਪੂਰੇਤੇਪਾਇਣਾ॥੩॥
anaathaa naath deen dukhbhanjan so gur pooray tay paa-inaa. ||3||
and who is the support of the supportless and destroyer of sufferings of the meek, His Name is revealed through the perfect Guru.||3|| ਜਿਹੜਾਨਿਖਸਮਿਆਂਦਾਖਸਮਹੈ, ਜਿਹੜਾਗ਼ਰੀਬਾਂਦੇਦੁੱਖਨਾਸਕਰਨਵਾਲਾਹੈ, ਉਹਪਰਮਾਤਮਾਦਾਨਾਮਪੂਰੇਗੁਰੂਪਾਸੋਂਮਿਲਦਾਹੈ॥੩॥
اناتھا ناتھُ دیِن دُکھ بھنّجنُ سو گُر پوُرے تے پائِنھا ॥੩॥
اناتھا ناتھ۔ بے مالوں کا مالک۔ دین ۔ غربوں ۔ عاجزوں ۔ مجبوروں ۔ دکھ ۔ بھنجن۔ عذآب مٹانیوالا (3)
اور جو عاجز لوگوں کی تکلیفوں کو سہارا دینے والا اور ان کو ختم کرنے والا ہے اس کا نام کامل گرو کے ذریعہ نازل ہوا ہے
ਹੋਰੁਦੁਆਰਾਕੋਇਨਸੂਝੈ॥
hor du-aaraa ko-ay na soojhai.
Guru Ji says, I cannot think of any other gate or place, from where Naam can be attained. ਹੋਰਕੋਈਦਰ (ਐਸਾ) ਨਹੀਂਸੁੱਝਦਾ (ਜਿਥੋਂਨਾਮ-ਰਤਨਮਿਲਸਕੇ)।
ہورُ دُیارا کوءِ ن سوُجھےَ ॥
سوجھے ۔ سمجھ نہیں آتا۔
دوسرا کوئی اسیا در سمجھ نہیں آتا
ਤ੍ਰਿਭਵਣਧਾਵੈਤਾਕਿਛੂਨਬੂਝੈ॥
taribhavanDhaavai taa kichhoo na boojhai.
Even if one searches for it in all the three worlds, one cannot understand anything about Naam. ਜੇਮਨੁੱਖਤਿੰਨਾਂਭਵਨਾਂਵਿਚਦੌੜ-ਭੱਜਕਰਦਾਫਿਰੇਤਾਂਭੀਉਸਨੂੰਨਾਮ-ਰਤਨਦੀਕੋਈਸਮਝਨਹੀਂਪੈਸਕਦੀ।
ت٘رِبھۄنھ دھاۄےَ تا کِچھوُ ن بوُجھےَ ॥
تربھون۔ تیونں عالومں میں۔ دھاوے ۔ ودڑبھج۔ تک و دؤ۔
خوآہ تینوں عالموں میں دوڑ دہوپ کرتا ہے تو بھی کوئی سمجھ نہ ائی گی
ਸਤਿਗੁਰੁਸਾਹੁਭੰਡਾਰੁਨਾਮਜਿਸੁਇਹੁਰਤਨੁਤਿਸੈਤੇਪਾਇਣਾ॥੪॥
satgur saahu bhandaar naam jis ih ratan tisai tay paa-inaa. ||4||
The true Guru alone has a storehouse of Naam with him. Therefore, this jewel can be received from him only. ||4|| ਇਕਗੁਰੂਹੀਐਸਾਸ਼ਾਹਹੈਜਿਸਦੇਪਾਸਨਾਮਦਾਖ਼ਜ਼ਾਨਾਹੈ।ਉਸਗੁਰੂਪਾਸੋਂਨਾਮ-ਰਤਨਮਿਲਸਕਦਾਹੈ॥੪॥
ستِگُرُ ساہُ بھنّڈارُ نامُ جِسُ اِہُ رتنُ تِسےَ تے پائِنھا ॥੪॥
ساہو۔ شاہ ۔ شاہوکار۔ بھنڈار۔ خزانہ ۔ پانا۔ پاتا ہے (4)
سچا مرشد نام کے خزانے کا شاہ ہے
ਜਾਕੀਧੂਰਿਕਰੇਪੁਨੀਤਾ॥
jaa kee Dhoor karay puneetaa.
The Guru, the dust of whose feet i.e. humble devotion purifies a person, ਜਿਸ (ਪ੍ਰਭੂ) ਦੀਚਰਨ-ਧੂੜਪਵਿੱਤਰਕਰਦੇਂਦੀਹੈ,
جا کیِ دھوُرِ کرے پُنیِتا ॥
پنتیا ۔ پاک ۔
جسکے پاؤں کی دہول انسان کو پاک بنا دیتی ہے
ਸੁਰਿਨਰਦੇਵਨਪਾਵਹਿਮੀਤਾ॥
sur nar dayv na paavahi meetaa.
O friend,even the heavenly beings and demi-gods cannot realize Him. ਹੇਮਿੱਤਰ! ਉਸਨੂੰਦੇਵਤੇਮਨੁੱਖਪ੍ਰਾਪਤਨਹੀਂਕਰਸਕਦੇ।
سُرِ نر دیۄ ن پاۄہِ میِتا ॥
سر۔ بہشت۔ کے رہنے والے ۔ نر ۔ انسان ۔ دیو ۔ دیوتے ۔ مٹا۔ اے دوست۔ سب پرک ھ۔ سچا انسان ۔
اسے اے دوست فرشتے اور انسان حاصل ہیں کر سکتے ۔
ਸਤਿਪੁਰਖੁਸਤਿਗੁਰੁਪਰਮੇਸਰੁਜਿਸੁਭੇਟਤਪਾਰਿਪਰਾਇਣਾ॥੫॥
sat purakh satgur parmaysar jis bhaytat paar paraa-inaa. ||5||
The true Guru alone is the embodiment of the all-pervading God, seeing whom and following whose teachings, one is ferried across (and emancipated from the rounds of births and deaths). ||5|| ਸਿਰਫ਼ਹਰੀ-ਰੂਪਗੁਰੂਪੁਰਖਹੀਹੈਜਿਸਨੂੰਮਿਲਿਆਂ (ਸੰਸਾਰ-ਸਮੁੰਦਰਤੋਂ) ਪਾਰਲੰਘਸਕੀਦਾਹੈ॥੫॥
ستِ پُرکھُ ستِگُرُ پرمیسرُ جِسُ بھیٹت پارِ پرائِنھا
ستگر ۔ سچا مرشد۔ پرمیسر۔ بڑا مالک۔ پار پرائنا۔ کامیابی حاصل ہونی ہے (5)
صرف سچا اسنان سچا مرشد ہی ہے جس کے ملاپ سے اس دنیاوی زندگی کے سمندر کو عبور کیا جاسکتا ہے (5)
ਪਾਰਜਾਤੁਲੋੜਹਿਮਨਪਿਆਰੇ॥
paarjaat lorheh man pi-aaray.
O’ my dear mind, if you wish to have Paarjaat – the mythical tree which fulfills one’s desires, ਹੇਪਿਆਰੇਮਨ! ਜੇਤੂੰ (ਸੁਰਗਦਾ) ਪਾਰਜਾਤ (ਰੁੱਖ) ਹਾਸਲਕਰਨਾਚਾਹੁੰਦਾਹੈਂ,
پارجاتُ لوڑہِ من پِیارے ॥
پارجات۔ دلی خواہشات کی مطابق پھل دینے والا بہشتی خیالی شجر۔ لوڑیہہ ۔ ضرورت
اے دل اگر تو بہشتی شجر حاصل کرنا چاہتاہے اگر تو چاہتا ہے کہ
ਕਾਮਧੇਨੁਸੋਹੀਦਰਬਾਰੇ॥
kaamDhayn sohee darbaaray.
and want that Kaamdhain – the wish fulfilling cow may adorn the court of your house, ਜੇਤੂੰਚਾਹੁੰਦਾਹੈਂਕਿਕਾਮਧੇਨਤੇਰੇਬੂਹੇਉਤੇਸੋਭਰਹੀਹੋਵੇ,
کامدھینُ سوہیِ دربارے ॥
۔ کام دھن۔ بہشتی گائے ۔ سوہی ۔ سجاوٹ دیتی ہے ۔
کہ بہشتی گائے تیرے در پر کھڑی اچھی لگے ۔
ਤ੍ਰਿਪਤਿਸੰਤੋਖੁਸੇਵਾਗੁਰਪੂਰੇਨਾਮੁਕਮਾਇਰਸਾਇਣਾ॥੬॥
taripat santokh sayvaa gur pooray naam kamaa-ay rasaa-inaa. ||6||
then follow the Guru’s teachings faithfully, which will give you full satisfaction and contentment. Thus you can earn the wealth of Naam, which is the source of all relishes. ||6|| ਤਾਂਪੂਰੇਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪਿਆਰਹੁ, ਗੁਰੂਪਾਸੋਂਪੂਰਨਸੰਤੋਖਪ੍ਰਾਪਤਕਰ, (ਗੁਰੂਦੇਰਾਹੇਤੁਰਕੇ) ਨਾਮ-ਸਿਮਰਨਦੀਕਮਾਈਕਰ, ਹਰਿ-ਨਾਮਹੀਸਾਰੇਰਸਾਂਦਾਸੋਮਾਹੈ॥੬॥
ت٘رِپتِ سنّتوکھُ سیۄا گُر پوُرے نامُ کماءِ رسائِنھا ॥੬॥
ترپت۔ تسلی۔ تسکین ۔ سنتوکھ۔ صبر۔ رسائنا۔ لطفوں کی کان (6)
کامل مرشد کی خدمت الہٰی نام سچ حق و حقیقت پر عمل صبر کر صابر رہ غرض یہ کہ الہٰی نام سے ہی ارے لطوں کا چشمہ حیات ہے (6)
ਗੁਰਕੈਸਬਦਿਮਰਹਿਪੰਚਧਾਤੂ॥
gur kai sabad mareh panch Dhaatoo.
O’ my mind, through the Guru’s word, the five evil impulses (lust, anger, greed, attachment, and ego) are destroyed, ਹੇਮੇਰੇਮਨ! ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਬਰਕਤਿਨਾਲਕਾਮਾਦਿਕਪੰਜੇਵਿਸ਼ੇਮਰਜਾਂਦੇਹਨ,
گُر کےَ سبدِ مرہِ پنّچ دھاتوُ ॥
پنچ دھاتو۔ پانچ بد احساسا۔
کالام و سبق مرشد سے پانچؤں بد احساسات و عمل ختم ہو اتے ہیں ۔
ਭੈਪਾਰਬ੍ਰਹਮਹੋਵਹਿਨਿਰਮਲਾਤੂ॥
bhai paarbarahm hoveh nirmalaa too.
and under the fear (respect) of the all-pervading God, you become immaculate. (ਗੁਰੂਦੇਸ਼ਬਦਦੀਰਾਹੀਂ) ਪਰਮਾਤਮਾਦੇਡਰ-ਅਦਬਵਿਚਰਹਿਕੇਤੂੰਪਵਿੱਤਰਹੋਜਾਇਂਗਾ।
بھےَ پارب٘رہم ہوۄہِ نِرملا توُ ॥
بھے پار برہم۔ الہٰی خوف نرملا۔ پاکیزہ ۔
خدا کے خوف سے انسان پاک ہوجاتا ہے ۔
ਪਾਰਸੁਜਬਭੇਟੈਗੁਰੁਪੂਰਾਤਾਪਾਰਸੁਪਰਸਿਦਿਖਾਇਣਾ॥੭॥
paaras jab bhaytai gur pooraa taa paaras paras dikhaa-inaa. ||7||
When one meets the Perfect Guru, the Philosopher’s Stone, the Guru’stouch reveals the presence of Almighty God everywhere. ||7|| ਗੁਰੂਹੀਪਾਰਸਹੈ।ਜਦੋਂਪੂਰਾਗੁਰੂ-ਪਾਰਸਮਿਲਪੈਂਦਾਹੈ, ਤਾਂਉਸਪਾਰਸਨੂੰਛੁਹਿਆਂ (ਪਰਮਾਤਮਾਹਰਥਾਂ) ਦਿੱਸਪੈਂਦਾਹੈ॥੭॥
پارسُ جب بھیٹےَ گُرُ پوُرا تا پارسُ پرسِ دِکھائِنھا ॥੭॥
پارس۔ ایک بٹی جس کے لوہے کے ساتھ چھونے سے سونا بن جاتا ہے ۔ پرس۔ چھوہ۔ دکھائنا۔ دیدار ہوتا ہے (7)
جب کامل مرشد سے ملاپ ہو جائے جو ایک پارس کی مانند ہے دیدار خدا وصل خدا ہوجاتا ہے (7)
ਕਈਬੈਕੁੰਠਨਾਹੀਲਵੈਲਾਗੇ॥
ka-ee baikunth naahee lavai laagay.
Even myriads of heavens do not equal the merits of meeting the true Guru. ਅਨੇਕਾਂਬੈਕੁੰਠ (ਗੁਰੂਦੇਦਰਸਨਦੀ) ਬਰਾਬਰੀਨਹੀਂਕਰਸਕਦੇ।
کئیِ بیَکُنّٹھ ناہیِ لۄےَ لاگے ॥
کئی بہشت اور جنت نیہں اسکے پایاں
ਮੁਕਤਿਬਪੁੜੀਭੀਗਿਆਨੀਤਿਆਗੇ॥
mukat bapurhee bhee gi-aanee ti-aagay.
A spiritually wise person forsakes even salvation considering it of little value compared to meeting with the Guru. ਜਿਹੜਾਮਨੁੱਖ (ਗੁਰੂਦੀਰਾਹੀਂ) ਪਰਮਾਤਮਾਨਾਲਸਾਂਝਪਾਂਦਾਹੈ, ਉਹਮੁਕਤੀਨੂੰਭੀਇਕਨਿਮਾਣੀਜਿਹੀਚੀਜ਼ਸਮਝਕੇ (ਇਸਦੀਲਾਲਸਾ) ਛਡਦੇਂਦਾਹੈ।
مُکتِ بپُڑیِ بھیِ گِیانیِ تِیاگے ॥
مکت۔ نجاات۔ بپٹری۔ بیچاری۔ گیانی۔ علام۔ تیاگے ۔ چھوڑے ۔
ایسی صورت میں عالم نجات کو بھی چھوڑ دیتے ہیں
ਏਕੰਕਾਰੁਸਤਿਗੁਰਤੇਪਾਈਐਹਉਬਲਿਬਲਿਗੁਰਦਰਸਾਇਣਾ॥੮॥
aykankaar satgur tay paa-ee-ai ha-o bal bal gur darsaa-inaa. ||8||
The One Universal Creator God is realized through the true Guru only. Therefore, I am really dedicated to the blessed vision of the Guru. ||8|| ਗੁਰੂਦੀਰਾਹੀਂਹੀਪਰਮਾਤਮਾਨਾਲਮਿਲਾਪਹੁੰਦਾਹੈ।ਮੈਂਤਾਂਗੁਰੂਦੇਦਰਸਨਤੋਂਸਦਾਸਦਕੇਹਾਂਸਦਾਸਦਕੇਹਾਂ॥੮॥
ایکنّکارُ ستِگُر تے پائیِئےَ ہءُ بلِ بلِ گُر درسائِنھا ॥੮॥
ایککنکار۔ واحد خدا درسائنا۔ درس۔ سبق۔ دیدار (8)
سچا مرشد کے وسیلے سے ہی واحد خدا کاملاپ حاصل ہوتا ہے یا ذریعہ ہے قربان وہں دیار مرشد ہر (8)
ਗੁਰਕੀਸੇਵਨਜਾਣੈਕੋਈ॥
gur kee sayv na jaanai ko-ee.
Nobody knows the secret of the merit of following the Guru’s teachings. ਗੁਰੂਦੀਸਰਨਪੈਣਦਾਕੀਹਮਹਾਤਮਹੈ -ਇਹਭੇਤਕੋਈਮਨੁੱਖਸਮਝਨਹੀਂਸਕਦਾ (ਸਰਨਪਿਆਂਹੀਸਮਝਪੈਂਦੀਹੈ)।
گُر کیِ سیۄ ن جانھےَ کوئیِ ॥
مرشد کی خدمت اور قد روقیمت کوئی نہیں سمجھتا مرشد ہی روحانیت میں خدا ہے
ਗੁਰੁਪਾਰਬ੍ਰਹਮੁਅਗੋਚਰੁਸੋਈ॥
gur paarbarahm agochar so-ee.
In reality, Guru himself is that incomprehensible all-pervading God.
ਗੁਰੂ (ਆਤਮਕਜੀਵਨਵਿਚ) ਉਹੀਪਰਮਾਤਮਾਹੈਜੋਗਿਆਨ-ਇੰਦ੍ਰਿਆਂਦੀਪਹੁੰਚਤੋਂਪਰੇਹੈ।
گُرُ پارب٘رہمُ اگوچرُ سوئیِ ॥
سوئی۔ وہی
جو انسانی عقل و ہوش سے بعی دہے مرید مرشد وہی ہوتا
ਜਿਸਨੋਲਾਇਲਏਸੋਸੇਵਕੁਜਿਸੁਵਡਭਾਗਮਥਾਇਣਾ॥੯॥
jis no laa-ay la-ay so sayvak jis vadbhaag mathaa-inaa. ||9||
Only the one in whose destiny it is so written, and whom God engages to follow the Guru’s teachings, becomes the devotee of the Guru. ||9|| ਜਿਸਮਨੁੱਖਦੇਮੱਥੇਦੇਭਾਗਜਾਗਪੈਣ, ਜਿਸਨੂੰ (ਪਰਮਾਤਮਾਆਪਗੁਰੂਦੀਚਰਨੀਂ) ਲਾਂਦਾਹੈਉਹਗੁਰੂਦਾਸੇਵਕਬਣਦਾਹੈ॥੯॥
جِس نو لاءِ لۓ سو سیۄکُ جِسُ ۄڈبھاگ متھائِنھا ॥੯॥
وڈبھاگ متھائنا۔ اسکی پیشانی ۔ پرتحریر بلند قسمت۔
جس کی پیشانی پر اسکی تقدیر بیدار ہو جائے ذہن روشن ہوجائے (9)
ਗੁਰਕੀਮਹਿਮਾਬੇਦਨਜਾਣਹਿ॥
gur kee mahimaa bayd na jaaneh.
Even the Vedas do not know about the glory of the Guru, ਗੁਰੂਦੀਉੱਚ-ਆਤਮਕਤਾਵੇਦ (ਭੀ) ਨਹੀਂਜਾਣਦੇ,
گُر کیِ مہِما بید ن جانھہِ ॥
مہما۔ عطمت۔ اہمیت۔ بزرگی ۔
مرشد کی عطمت و بلندی کا ویدوں کو بھی خبرنہیں ۔
ਤੁਛਮਾਤਸੁਣਿਸੁਣਿਵਖਾਣਹਿ॥
tuchh maat sun sun vakaaneh.
They have described only a little bit of Guru’s glory by hearing from others. ਉਹ (ਹੋਰਨਾਂਪਾਸੋਂ) ਸੁਣਸੁਣਕੇਰਤਾ-ਮਾਤ੍ਰਹੀਬਿਆਨਕਰਸਕੇਹਨ।
تُچھ مات سُنھِ سُنھِ ۄکھانھہِ ॥
تپھ مات۔ بہت کم۔
دو دوسروں سے سنر سنکر ذراسی بات بناتے ہیں کامیابی بخشنے وال اخدا ہایت وسیع سچا مرشد ہے ۔
ਪਾਰਬ੍ਰਹਮਅਪਰੰਪਰਸਤਿਗੁਰਜਿਸੁਸਿਮਰਤਮਨੁਸੀਤਲਾਇਣਾ॥੧੦॥
paarbarahm aprampar satgur jis simrat man seetlaa-inaa. ||10||
In fact, the true Guru himself is the all-pervading, infinite God, meditating on whom one’s mind is pacified. ||10|| ਗੁਰੂ (ਉੱਚ-ਆਤਮਕਤਾਵਿਚ) ਉਹਪਰਮਾਤਮਾਹੀਹੈਜੋਪਰੇਤੋਂਪਰੇਹੈਅਤੇਜਿਸਦਾਨਾਮਸਿਮਰਦਿਆਂਮਨਸੀਤਲਹੋਜਾਂਦਾਹੈ॥੧੦॥
پارب٘رہم اپرنّپر ستِگُر جِسُ سِمرت منُ سیِتلائِنھا ॥੧੦॥
اپنپر۔ نہایت وسیع۔ سیتلاینا۔ ٹھنڈک۔ سکنو (10)
جس کی یادوریاض سے من ٹھنڈک اور سکون پاتا ہے (10)
ਜਾਕੀਸੋਇਸੁਣੀਮਨੁਜੀਵੈ॥
jaa kee so-ay sunee man jeevai.
Guru is one, listening to whose glory, the mind feels rejuvenated, ਜਿਸ (ਗੁਰੂ) ਦੀਸੋਭਾਸੁਣਕੇਮਨਆਤਮਕਜੀਵਨਪ੍ਰਾਪਤਕਰਦਾਹੈ,
جا کیِ سوءِ سُنھیِ منُ جیِۄےَ ॥
سوئے ۔ شہرت۔ من جیوئے ۔ دل کو زندگی ملی۔
جسکی شہرت سننے سے من کو روحانی واخلاقی زندگی نصبی ہوتی ہے
ਰਿਦੈਵਸੈਤਾਠੰਢਾਥੀਵੈ॥
ridai vasai taa thandhaa theevai.
if he comes to reside in the heart, it feels soothed. ਜੇਗੁਰੂ (ਮਨੁੱਖਦੇ) ਹਿਰਦੇਵਿਚਆਵੱਸੇ, ਤਾਂਹਿਰਦਾਸ਼ਾਂਤਹੋਜਾਂਦਾਹੈ।
رِدےَ ۄسےَ تا ٹھنّڈھا تھیِۄےَ ॥
ردے وسے ۔ ذہن نشین ہوا ۔ ٹھنڈا۔ تھویئے ۔ سکون پائے ۔
دل میں بس جائے تو ذہن کو ٹھڈک متی ہے ۔
ਗੁਰੁਮੁਖਹੁਅਲਾਏਤਾਸੋਭਾਪਾਏਤਿਸੁਜਮਕੈਪੰਥਿਨਪਾਇਣਾ॥੧੧॥
gur mukhahu alaa-ay taa sobhaa paa-ay tis jam kai panth na paa-inaa. ||11||
If following the Guru’s teachings, a person recites Naam, he achieves glory, and is not made to tread on the path of death (to suffer the pain of birth and death again). ||11|| ਜੇਮਨੁੱਖਗੁਰੂਦੇਰਸਤੇਉੱਤੇਤੁਰਕੇਹਰਿ-ਨਾਮਸਿਮਰੇ, ਤਾਂਮਨੁੱਖ (ਲੋਕਪਰਲੋਕਵਿਚ) ਸੋਭਾਖੱਟਦਾਹੈ, ਗੁਰੂਉਸਮਨੁੱਖਨੂੰਜਮਰਾਜਦੇਰਸਤੇਨਹੀਂਪੈਣਦੇਂਦਾ॥੧੧॥
گُرُ مُکھہُ الاۓ تا سوبھا پاۓ تِسُ جم کےَ پنّتھِ ن پائِنھا ॥੧੧॥
الائے ۔ بیان کرے ۔ جم کے پنتھ۔ موت کی رہا پر (11)
بار بار رو گرو زبان سے کہن ے پر شہرت نصیب ہوتی ہے ۔ اسے اخلاقی موت کی راہ پر نہیں چلنا پڑتا ہے (11)

ਸੰਤਨਕੀਸਰਣਾਈਪੜਿਆ॥
santan kee sarnaa-ee parhi-aa.
A person should pray, O’ God, I have also sought the sanctuary of Your saints, ਹੇਪ੍ਰਭੂ! ਮੈਂਭੀਤੇਰੇਸੰਤਜਨਾਂਦੀਸਰਨਆਪਿਆਹਾਂ,
سنّتن کیِ سرنھائیِ پڑِیا ॥
سرنائی۔ پناہ گیری ۔
ایک انسان کو خدا سے ہی دعا کرنی چاہیے کہ میں تیر ہی پناہ میں رہتا ہوں۔
ਜੀਉਪ੍ਰਾਣਧਨੁਆਗੈਧਰਿਆ॥
jee-o paraanDhan aagai Dhari-aa.
and I have surrendered my soul, breath, and wealth before them. ਮੈਂਆਪਣੀਜਿੰਦਆਪਣੇਪ੍ਰਾਣਆਪਣਾਧਨਸੰਤਜਨਾਂਦੇਅੱਗੇਲਿਆਰੱਖਿਆਹੈ।
جیِءُ پ٘رانھ دھنُ آگےَ دھرِیا ॥
جیؤ۔ روح۔ زدگی۔ پراندھن۔ زندگی کا سرمایہ۔
میں نے تمام تر دنیاوی دولت اور اپنی زندگی کا سارا سرمایا خدا کو پیش کر دیا۔
ਸੇਵਾਸੁਰਤਿਨਜਾਣਾਕਾਈਤੁਮਕਰਹੁਦਇਆਕਿਰਮਾਇਣਾ॥੧੨॥
sayvaa surat na jaanaa kaa-ee tum karahu da-i-aa kirmaa-inaa. ||12||
I do not have any knowledge or awareness about the way of following the Guru’s teachings. Please show mercy and guide me – the humble being in this endeavor. ||12||
I do not have any knowledge or awareness about the way to meditate. Please show mercy and guide me – the humble being in this endeavor. ||12||
ਮੈਂਸੇਵਾ-ਭਗਤੀਕਰਨਦੀਕੋਈਸੂਝਨਹੀਂਜਾਣਦਾ।ਮੈਂਨਿਮਾਣੇਉੱਤੇਤੂੰਆਪਹੀਕਿਰਪਾਕਰ॥੧੨॥
سیۄا سُرتِ ن جانھا کائیِ تُم کرہُ دئِیا کِرمائِنھا ॥੧੨॥
کیرمانیا۔ ناچیز کیڑے جیسا ۔ دیا ۔ مہربانی
مجھے خدمتکی ہوش و سمجھ ہیں ہے مجھ نا چیز کیڑے پر مہربانی کرؤ (12)
ਨਿਰਗੁਣਕਉਸੰਗਿਲੇਹੁਰਲਾਏ॥
nirgun ka-o sang layho ralaa-ay.
O’ God, please unite this meritless one with the company of the Guru. ਹੇਪ੍ਰਭੂ! ਮੈਨੂੰਗੁਣ-ਹੀਣਨੂੰਗੁਰੂਦੀਸੰਗਤਵਿਚਰਲਾਈਰੱਖ।
نِرگُنھ کءُ سنّگِ لیہُ رلاۓ ॥
نرگن۔ بے اوصاف ۔ سنگ ۔ ساتھ۔
مجھ بے اوصاف کو اپنا ساتھی بنالو
ਕਰਿਕਿਰਪਾਮੋਹਿਟਹਲੈਲਾਏ॥
kar kirpaa mohi tahlai laa-ay.
Showing Your mercy, engage me into following the teachings of the Guru. ਮੈਨੂੰਗੁਰੂਦੀਸੇਵਾ-ਟਹਲਵਿਚਜੋੜੀਰੱਖ।
کرِ کِرپا موہِ ٹہلےَ لاۓ ॥
ٹہلے ۔ خدمت (13)
والی اللہ کی پناہ لے لی ہے اور نزدگی اسے پیش کر دی ہے ۔
ਪਖਾਫੇਰਉਪੀਸਉਸੰਤਆਗੈਚਰਣਧੋਇਸੁਖੁਪਾਇਣਾ॥੧੩॥
pakhaa fayra-o peesa-o sant aagai charanDho-ay sukh paa-inaa. ||13||
Please bless me that I may wave the fan, grind the corn, and enjoy the bliss of washing the Guru’s feet (and humbly following his teachings). ||13||
ਮੈਂਗੁਰੂਸੰਤਜਨਾਂਦੇਦਰਤੇਪੱਖਾਝੱਲਦਾਰਹਾਂ, (ਚੱਕੀ) ਪੀਂਹਦਾਰਹਾਂ, ਤੇਗੁਰੂਦੇਚਰਨਧੋਕੇਆਨੰਦਮਾਣਦਾਰਹਾਂ॥੧੩॥
پکھا پھیرءُ پیِسءُ سنّت آگےَ چرنھ دھوءِ سُکھُ پائِنھا
اور کرم و عنایت سے اپنی خدمت کرواؤ پنکھا جھولوں چکی پیسوں اور سنت کے چرن دہوکر سکون پاوں (13)
ਬਹੁਤੁਦੁਆਰੇਭ੍ਰਮਿਭ੍ਰਮਿਆਇਆ॥
bahutdu-aaray bharam bharam aa-i-aa.
O’ God, I have come back after wandering around at many doors. ਹੇਪ੍ਰਭੂ! ਮੈਂਦਰਵਾਜ਼ਿਆਂਤੇਭਟਕਭਟਕਕੇਆਇਆਹਾਂ।
بہُتُ دُیارے بھ٘رمِ بھ٘رمِ آئِیا ॥
بھرم بھرم۔ بھٹکن بھٹکن کر ۔
میں بہت سے دروں پر بھٹک بھٹک کر
ਤੁਮਰੀਕ੍ਰਿਪਾਤੇਤੁਮਸਰਣਾਇਆ॥
tumree kirpaa tay tum sarnaa-i-aa.
Now by Your grace, I have come to Your refuge. ਤੇਰੀਹੀਕਿਰਪਾਨਾਲ (ਹੁਣ) ਤੇਰੀਸਰਨਆਇਆਹਾਂ।
تُمریِ ک٘رِپا تے تُم سرنھائِیا ॥
تم سرنائیا۔ تیری زیر پناہ۔
اب تیری رحمت سے میں اس در پر آئیا ہو ں
ਸਦਾਸਦਾਸੰਤਹਸੰਗਿਰਾਖਹੁਏਹੁਨਾਮਦਾਨੁਦੇਵਾਇਣਾ॥੧੪॥
sadaa sadaa santeh sang raakho ayhu naam daan dayvaa-inaa. ||14||
Please keep me forever in the company of the saints, and help me get the gift of Naam from them. ||14|| ਮੈਨੂੰਸਦਾਹੀਆਪਣੇਸੰਤਜਨਾਂਦੀਸੰਗਤਵਿਚਰੱਖ, ਅਤੇਉਹਨਾਂਪਾਸੋਂਆਪਣੇਨਾਮਦਾਖ਼ੈਰਪਵਾ॥੧੪॥
سدا سدا سنّتہ سنّگِ راکھہُ ایہُ نام دانُ دیۄائِنھا
سنتہہ سنگ۔ پار ساون پاکدامنوں کی صحبت (!4)
اب تیرا پناہگیریوں مجھے ہمیشہ کے لئے صحبت سنت میں رکھ اور ان سے
ਭਏਕ੍ਰਿਪਾਲਗੁਸਾਈਮੇਰੇ॥
bha-ay kirpaal gusaa-ee mayray.
When (listening to my prayer), my God – the Master of universe became merciful upon me, ਜਦੋਂ (ਹੁਣ) ਮੇਰਾਮਾਲਕ-ਪ੍ਰਭੂਦਇਆਵਾਨਹੋਇਆ,
بھۓ ک٘رِپال گُسائیِ میرے ॥
گوسائی ۔ مالک۔
الہٰی نام سچ حق و حقیقت کی بھیک دلوا اے خدا (14)
ਦਰਸਨੁਪਾਇਆਸਤਿਗੁਰਪੂਰੇ॥
darsan paa-i-aa satgur pooray.
then I envisioned the perfect true Guru. ਤਾਂਮੈਨੂੰਪੂਰੇਗੁਰੂਦਾਦਰਸਨਹੋਇਆ।
درسنُ پائِیا ستِگُر پوُرے ॥
درسن۔ دیدار۔
پھر مجھے خدا کا دیدار نصیب ہوا۔
ਸੂਖਸਹਜਸਦਾਆਨੰਦਾਨਾਨਕਦਾਸਦਸਾਇਣਾ॥੧੫॥੨॥੭॥
sookh sahj sadaa aanandaa naanak daas dasaa-inaa. ||15||2||7||
O’ Nanak, Now I am always in a state of peace, poise, and bliss, and feel privileged to be the devotee of His (God’s) devotees. ||15||2||7|| ਹੇਨਾਨਕ! ਹੁਣਮੇਰੇਅੰਦਰਸਦਾਆਤਮਕਅਡੋਲਤਾਤੇਸੁਖ-ਆਨੰਦਬਣੇਰਹਿੰਦੇਹਨ।ਮੈਂਉਸਦੇਦਾਸਾਂਦਾਦਾਸਬਣਿਆਰਹਿੰਦਾਹਾਂ॥੧੫॥੨॥੭॥
سوُکھ سہج سدا آننّدا نانک داس دسائِنھا
سوکھ سہج۔ روحانی سکون ۔ داس وسانیا۔ غلاموں کا گلام۔
اے نانک جب مہربانہوا میر آقتا تو کامل مرشد کا دیدار ہوا۔ اب ہمیشہ روحای وزہنی سکون رہتا ہے اور غلاموں کا غلام ہوں میں۔
ਮਾਰੂਸੋਲਹੇਮਹਲਾ੫
maaroo solhay mehlaa 5
Raag Maaroo, Solahas, Fifth Guru: ਰਾਗਮਾਰੂਵਿੱਚਗੁਰੂਅਰਜਨਦੇਵਜੀਦੀਬਾਣੀ ‘ਸੋਹਲੇ’ (੧੬ਬੰਦਾਂਵਾਲੀਬਾਣੀ)।
ماروُ سولہے مہلا ੫
ੴਸਤਿਗੁਰਪ੍ਰਸਾਦਿ॥
ik-oNkaar satgur parsaad.
One eternal God, realized by the grace of the true Guru: ਅਕਾਲਪੁਰਖਇੱਕਹੈਅਤੇਸਤਿਗੁਰੂਦੀਕਿਰਪਾਨਾਲਮਿਲਦਾਹੈ।
ایک اونکار ستِگُر پ٘رسادِ ॥
ایک لازوال خالق خدا۔ سچے گرو کی فضل سے جانا گیا
ਸਿਮਰੈਧਰਤੀਅਰੁਆਕਾਸਾ॥
simrai Dhartee ar aakaasaa.
The earth and the sky remember God and operate as per His Will. ਧਰਤੀਪਰਮਾਤਮਾਦੀਰਜ਼ਾਵਿਚਤੁਰਰਹੀਹੈਆਕਾਸ਼ਉਸਦੀਰਜ਼ਾਵਿਚਹੈ।
سِمرےَ دھرتیِ ارُ آکاسا ॥
سمرے۔یاد رکھتا ہے ۔ آکاسا۔ آسمان۔
زمین اور آسمان بھی یاد خدا کو کرتے ہیں
ਸਿਮਰਹਿਚੰਦਸੂਰਜਗੁਣਤਾਸਾ॥
simrahi chand sooraj guntaasaa.
The sun and the moon remember God, the Treasure of virtues and move as per His Will. ਚੰਦਅਤੇਸੂਰਜਉਸਗੁਣਾਂਦੇਖ਼ਜ਼ਾਨੇਪ੍ਰਭੂਦੀਰਜ਼ਾਵਿਚਤੁਰਰਹੇਹਨ.
سِمرہِ چنّد سوُرج گُنھتاسا ॥
گن تاسا۔ اوصاف کے خزانے ۔
چاند اور سورج بھی جو خزانے اوصاف کے ہیں یاد خدا کو کرتے ہیں
ਪਉਣਪਾਣੀਬੈਸੰਤਰਸਿਮਰਹਿਸਿਮਰੈਸਗਲਉਪਾਰਜਨਾ॥੧॥
pa-un paanee baisantar simrahi simrai sagal upaarjanaa. ||1||
The air, water and fire meditate in His remembrance. The whole creation meditates in His remembrance as well. ||1|| ਹਵਾਪਾਣੀਅੱਗ (ਆਦਿਕਤੱਤ) ਪ੍ਰਭੂਦੀਰਜ਼ਾਵਿਚਕੰਮਕਰਰਹੇਹਨ।ਸਾਰੀਸ੍ਰਿਸ਼ਟੀਉਸਦੀਰਜ਼ਾਵਿਚਕੰਮਕਰਰਹੀਹੈ॥੧॥
پئُنھ پانھیِ بیَسنّتر سِمرہِ سِمرےَ سگل اُپارجنا ॥੧॥
پؤن ۔ ہوا۔ بیسنتر۔ آگل۔ سگل۔ سارے ۔ اپار جنا ۔ عام لوگ (1)
ہوا پانی اور آگ غر ض یہ کہ ساری قائنات قدرت یاد خدا کو کرتی ہے (1)