Urdu-Page-320

SGGS Page 320
ਪਉੜੀ 
pa-orhee.
Pauree:
پئُڑی 
پیوری:
ਤਿਸੈ ਸਰੇਵਹੁ ਪ੍ਰਾਣੀਹੋ ਜਿਸ ਦੈ ਨਾਉ ਪਲੈ 
tisai sarayvhu paraaneeho jis dai naa-o palai.
O’ mortals, follow teaching of that Guru who holds the treasure of God’s Name.
ਹੇ ਬੰਦਿਓਉਸ ਗੁਰੂ ਨੂੰ,ਸੇਵਹੁ ਜਿਸ ਦੇ ਪੱਲੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਹੈ 
تِسےَ سریوہُ پ٘راݨیِہۄ جِس دےَ ناءُ پلےَ 
اے انسانوں ، اس گرو کی تعلیم پر عمل کریں جو خدا کے نام کا خزانہ رکھتے ہیں

۔
ਐਥੈ ਰਹਹੁ ਸੁਹੇਲਿਆ ਅਗੈ ਨਾਲਿ ਚਲੈ 
aithai rahhu suhayli-aa agai naal chalai.
You shall dwell in peace here; and this Naam shall accompany you hereafter.
ਇਥੇ ਸੁਖੀ ਰਹੋਗੇ ਤੇ ਪਰਲੋਕ ਵਿਚ (ਇਹ ਨਾਮਤੁਹਾਡੇ ਨਾਲ ਜਾਏਗਾ 
ایَتھےَ رہہُ سُہیلِیا اگےَ نالِ چلےَ 
تم یہاں امن سے رہو گے۔ اور یہ نام اس کے بعد آپ کے ساتھ ہوگا۔


ਘਰੁ ਬੰਧਹੁ ਸਚ ਧਰਮ ਕਾ ਗਡਿ ਥੰਮੁ ਅਹਲੈ 
ghar banDhhu sach Dharam kaa gad thamm ahlai.
Build the home of truth and righteousness, with the unshakable pillars of faith.
ਪੱਕਾ ਥੰਮ੍ਹ ਗੱਡ ਕੇ ਸਦਾ ਕਾਇਮ ਰਹਿਣ ਵਾਲੇ ਧਰਮ ਦਾ ਮੰਦਰ (ਸਤਿਸੰਗਬਣਾਓ
گھرُ بنّدھہُ سچ دھرم کا گڈِ تھنّمُ اہلےَ 
ایمان کے غیر متزلزل ستونوں کے ساتھ ، حق اور راستبازی کا گھر بنائیں۔


ਓਟ ਲੈਹੁ ਨਾਰਾਇਣੈ ਦੀਨ ਦੁਨੀਆ ਝਲੈ 
ot laihu naaraa-inai deen dunee-aa jhalai.
Seek only the refuge of God who provides both spiritual and worldly support.
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੀ ਟੇਕ ਰੱਖੇ ਜੋ ਦੀਨ ਤੇ ਦੁਨੀਆ ਨੂੰ ਆਸਰਾ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈ
اۄٹ لیَہُ نارائِݨےَ دیِن دُنیِیا جھلےَ 
صرف خدا کی پناہ مانگو جو روحانی اور دنیاوی مدد فراہم کرتا ہے۔


ਨਾਨਕ ਪਕੜੇ ਚਰਣ ਹਰਿ ਤਿਸੁ ਦਰਗਹ ਮਲੈ 
naanak pakrhay charan har tis dargeh malai. ||8||
O’ Nanak, he who leans on God’s support ensures a seat in God’s Court.||8||
ਹੇ ਨਾਨਕਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇ ਪੈਰ ਫੜੇ ਹਨ ਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਦਰਗਾਹ ਮੱਲੀ ਰੱਖਦਾ ਹੈ l
نانک پکڑے چرݨ ہرِ تِسُ درگہ ملےَ 8
اےنانک جو خدا کی تائید پر قرض دیتا ہے وہ خدا کی عدالت میں ایک نشست کو یقینی بناتا ہے


ਸਲੋਕ ਮਃ  
salok mehlaa 5.
Salok, Fifth Guru:
سلۄک م: 5 
صلوک ، پانچواں گرو:
ਜਾਚਕੁ ਮੰਗੈ ਦਾਨੁ ਦੇਹਿ ਪਿਆਰਿਆ 
jaachak mangai daan deh pi-aari-aa.
O’ my beloved God, I, a beggar is begging for alms of Naam from You.
ਹੇ ਮੇਰੇ ਪ੍ਰੀਤਮਮੈਂ ਮੰਗਤਾ (ਤੇਰੇ ਅਪਾਰ ਸ਼ਬਦ‘ ਦਾਖ਼ੈਰ ਮੰਗਦਾ ਹਾਂਮੈਨੂੰ ਖ਼ੈਰ ਪਾ
جاچکُ منّگےَ دانُ دیہِ پِیارِیا ۔ 
اے میرے پیارے خدا میں ایک بھکاری آپ سے نام کے بھیک مانگ رہا ہوں۔


ਦੇਵਣਹਾਰੁ ਦਾਤਾਰੁ ਮੈ ਨਿਤ ਚਿਤਾਰਿਆ 
dayvanhaar daataar mai nit chitaari-aa.
O’ my beneficent Giver, I always remember You with loving devotion.
ਤੂੰ ਦਾਤਾਂ ਦੇਣ ਵਾਲਾ ਹੈਂਤੂੰ ਦਾਤਾਂ ਦੇਣਜੋਗ ਹੈਂਮੈਂ ਤੈਨੂੰ ਸਦਾ ਚੇਤੇ ਕਰਦਾ ਹਾਂ
دیوݨہارُ داتارُ مےَ نِت چِتارِیا 
اے عظیم داتا، اے عطا فرمانے والا ، میرا شعور مستقل طور پر آپ پر مرکوز ہے


ਨਿਖੁਟਿ  ਜਾਈ ਮੂਲਿ ਅਤੁਲ ਭੰਡਾਰਿਆ 
nikhut na jaa-ee mool atul bhandaari-aa.
Your treasure of Naam is limitless; it doesn’t fall short at all by giving.
ਤੇਰਾ ਖ਼ਜ਼ਾਨਾ ਬੇਅੰਤ ਹੈ (ਜੇ ਵਿਚੋਂ ਮੈਨੂੰ ਖ਼ੈਰ ਪਾ ਦੇਵੇਂ ਤਾਂਮੁੱਕਦਾ ਨਹੀਂ
نِکھُٹِ ن جائی مۄُلِ اتُل بھنّڈارِیا 
آپ کا نام خزانہ لا محدود ہے۔ یہ دے کر بالکل بھی کمی نہیں ہوتی ہے۔


ਨਾਨਕ ਸਬਦੁ ਅਪਾਰੁ ਤਿਨਿ ਸਭੁ ਕਿਛੁ ਸਾਰਿਆ 
naanak sabad apaar tin sabh kichh saari-aa. ||1||
O’ Nanak, infinite is the divine word of God’s praises, which has accomplished all my tasks.||1||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੀਬਾਣੀ ਅਪਾਰ ਹੈਇਸ ਬਾਣੀ ਨੇ ਮੇਰਾ ਹਰੇਕ ਕਾਰਜ ਸੰਵਾਰ ਦਿੱਤਾ ਹੈ 
نانک سبدُ اپارُ تِنِ سبھُ کِچھُ سارِیا 1
اے نانک ، لاتعداد خدا کی حمد کا الہی کلام ہے ، جس نے میرے تمام کام انجام دیئے ہیں


ਮਃ  
mehlaa 5.
Salok, Fifth Guru:
م: 5 
صلوک ، پانچواں گرو:
ਸਿਖਹੁ ਸਬਦੁ ਪਿਆਰਿਹੋ ਜਨਮ ਮਰਨ ਕੀ ਟੇਕ 
sikhahu sabad pi-aariho janam maran kee tayk.
O’ my dear friends, learn and act upon the Guru’s word because it provides support throughout life.
ਹੇ ਪਿਆਰੇ ਸੱਜਣੋਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਵਾਲੀ ਗੁਰਬਾਣੀ ਚੇਤੇ ਰੱਖਣ ਦੀ ਆਦਤ ਬਣਾਓਇਹ ਸਾਰੀ ਉਮਰ ਦਾ ਆਸਰਾ ਬਣਦੀ ਹੈ
سِکھہُ سبدُ پِیارِہۄ جنم مرن کی ٹیک 
اے سکھوں! زندگی اور موت میں ، یہ ہمارا واحد سہارا ہے


ਮੁਖ ਊਜਲ ਸਦਾ ਸੁਖੀ ਨਾਨਕ ਸਿਮਰਤ ਏਕ 
mukh oojal sadaa sukhee naanak simrat ayk. ||2||
O’ Nanak, by remembering God with love and devotion, one always remains peaceful in this world and is honored in God’s Court.||2||
ਹੇ ਨਾਨਕਇਕ ਪ੍ਰਭੂ ਨੂੰ ਸਿਮਰਿਆਂ ਸਦਾ ਸੁਖੀ ਰਹੀਦਾ ਹੈ (ਤੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਦਰਗਾਹ ਵਿਚਮੱਥਾ ਖਿੜਿਆ ਰਹਿੰਦਾ ਹੈ 
مُکھ اۄُجل سدا سُکھی نانک سِمرت ایک 2
اے نانک آپ کا چہرہ چمک اٹھے گا ، اور اے نانک ، آپ کو ایک ہی رب کی یاد میں یاد کرتے ہوئے ، دیرپا سکون ملے گا


ਪਉੜੀ 
pa-orhee.
Pauree:
پئُڑی 
پیوری:
ਓਥੈ ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਵੰਡੀਐ ਸੁਖੀਆ ਹਰਿ ਕਰਣੇ 
othai amrit vandee-ai sukhee-aa har karnay.
There, in the holy congregation, the nectar of God’s Name is distributed; which provides peace to all.
ਸਭ ਜੀਵਾਂ ਨੂੰ ਸੁਖੀ ਕਰਨ ਵਾਲਾ ਹਰੀਨਾਮ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਉਸ ਸਤਸੰਗ ਵਿਚ ਵੰਡੀਦਾ ਹੈ l
اۄتھےَ انّم٘رِتُ ونّڈیِۓَ سُکھیِیا ہرِ کرݨے 
وہاں ، مقدس جماعت میں ، خدا کے نام کا امرت تقسیم کیا گیا ہے۔ جو سب کو امن فراہم کرتا ہے۔


ਜਮ ਕੈ ਪੰਥਿ  ਪਾਈਅਹਿ ਫਿਰਿ ਨਾਹੀ ਮਰਣੇ 
jam kai panth na paa-ee-ah fir naahee marnay.
Those who receive this Nectar are not put on the path of demon of death, and therefore they are not afraid of death.
ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਉਹ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰਦੇ ਹਨ ਉਹ ਜਮ ਦੇ ਰਾਹ ਤੇ ਨਹੀਂ ਪਾਏ ਜਾਂਦੇਉਹਨਾਂ ਨੂੰ ਮੁੜ ਮੌਤ ਦਾ ਡਰ ਵਿਆਪਦਾ ਨਹੀਂ
جم کےَ پنّتھِ ن پائیِئہِ پھِرِ ناہی مرݨے 
جو لوگ یہ امرت حاصل کرتے ہیں وہ موت کے آسیب کے راستے پر نہیں ڈالتے ہیں ، اور اسی وجہ سے وہ موت سے نہیں ڈرتے ہیں۔


ਜਿਸ ਨੋ ਆਇਆ ਪ੍ਰੇਮ ਰਸੁ ਤਿਸੈ ਹੀ ਜਰਣੇ 
jis no aa-i-aa paraym ras tisai hee jarnay.
One who enjoys the elixir of God’s Love, experiences this bliss.
ਜਿਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਹਰਿਨਾਮ ਦੇ ਪਿਆਰ ਦਾ ਸੁਆਦ ਆਉਂਦਾ ਹੈਉਹ ਇਸ ਸੁਆਦ ਨੂੰ ਆਪਣੇ ਅੰਦਰ ਟਿਕਾਂਦਾ ਹੈ
جِس نۄ آئِیا پ٘ریم رسُ تِسےَ ہی جرݨے 
جو شخص خدا کی محبت کے امارت سے لطف اندوز ہوتا ہے ، اسے اس نعمت کا سامنا ہوتا ہے۔


ਬਾਣੀ ਉਚਰਹਿ ਸਾਧ ਜਨ ਅਮਿਉ ਚਲਹਿ ਝਰਣੇ 
banee uchrahi saaDh jan ami-o chaleh jharnay.
In the holy congregation, the saintly persons utter such sweet words of God’s praises as if the springs of nectar of Naam are flowing.
ਸਤਸੰਗ ਵਿਚ ਗੁਰਮੁਖ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਦੀ ਬਾਣੀ ਉਚਾਰਦੇ ਹਨ ਓਥੇ ਅੰਮ੍ਰਿਤ ਦੇਮਾਨੋਫੁਹਾਰੇ ਚੱਲ ਪੈਂਦੇ ਹਨ
باݨی اُچرہِ سادھ جن امِءُ چلہِ جھرݨے 
مقدس جماعت میں ، سنت پرست لوگ خدا کی حمد کے اس طرح کے میٹھے الفاظ کہتے ہیں گویا نام کے امرت کے چشمے بہہ رہے ہیں۔


ਪੇਖਿ ਦਰਸਨੁ ਨਾਨਕੁ ਜੀਵਿਆ ਮਨ ਅੰਦਰਿ ਧਰਣੇ 
paykh darsan naanak jeevi-aa man andar Dharnay. ||9||
Beholding such a sight of the holy congregation, Nanak feels rejuvenated and he is enshrining God’s Name within his heart.||9||
ਨਾਨਕ (ਭੀ ਉਸ ਸਤਸੰਗ ਦਾਦਰਸ਼ਨ ਕਰ ਕੇ ਜੀਊ ਰਿਹਾ ਹੈ ਤੇ ਮਨ ਵਿਚ ਹਰਿਨਾਮ ਨੂੰ ਧਾਰਨ ਕਰ ਰਿਹਾ ਹੈ 
پیکھِ درسنُ نانکُ جیِوِیا من انّدرِ دھرݨے 9
مقدس اجتماع کا ایسا نظارہ دیکھ کر ، نانک کو نیا پن محسوس ہوتا ہے اور وہ اپنے دل میں خدا کا نام روشن کر رہا ہے۔ 


ਸਲੋਕ ਮਃ  
salok mehlaa 5.
Salok, Fifth Guru:
سلۄک م: 5 
صلوک ، پانچواں گرو:
ਸਤਿਗੁਰਿ ਪੂਰੈ ਸੇਵਿਐ ਦੂਖਾ ਕਾ ਹੋਇ ਨਾਸੁ 
satgur poorai sayvi-ai dookhaa kaa ho-ay naas.
Serving by following the teachings of the Perfect true Guru, all sufferings end.
ਪੂਰੇ ਗੁਰੂ ਦੇ ਦੱਸੇ ਰਾਹ ਤੇ ਤੁਰੀਏ ਤਾਂ ਦੁੱਖਾਂ ਦਾ ਨਾਸ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ,
ستِگُرِ پۄُرےَ سیوِۓَ دۄُکھا کا ہۄءِ ناسُ 
کامل سچے گرو کی تعلیمات پر عمل کرنے سے ، تمام تکالیف ختم ہوجاتے ہیں۔


ਨਾਨਕ ਨਾਮਿ ਅਰਾਧਿਐ ਕਾਰਜੁ ਆਵੈ ਰਾਸਿ 
naanak naam araaDhi-ai kaaraj aavai raas. ||1||
O’ Nanak, by meditating on God’s Name, our aim of life is accomplished successfully.
ਹੇ ਨਾਨਕਨਾਮ ਦਾ ਸਿਮਰਨ ਕਰਨ ਦੁਆਰਾ ਜੀਵਨ ਦਾ ਮਨੋਰਥ ਸਫਲ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
نانک نامِ ارادھِۓَ کارجُ آوےَ راسِ 1
اےنانک خدا کے نام پر غور کرنے سے ، ہماری زندگی کا مقصد کامیابی کے ساتھ مکمل ہو گیا ہے۔


ਮਃ  
mehlaa 5.
Salok, Fifth Guru:
م: 5 
صلوک ، پانچواں گرو:
ਜਿਸੁ ਸਿਮਰਤ ਸੰਕਟ ਛੁਟਹਿ ਅਨਦ ਮੰਗਲ ਬਿਸ੍ਰਾਮ 
jis simrat sankat chhuteh anad mangal bisraam.
Remembering God with love and devotion, troubles depart, and one comes to dwell in peace and bliss.
ਜਿਸ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨੂੰ ਸਿਮਰਿਆਂ ਸਾਰੇ ਦੁੱਖ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦੇ ਹਨ ਤੇ (ਹਿਰਦੇ ਵਿਚਅਨੰਦ ਖ਼ੁਸ਼ੀਆਂ ਦਾ ਨਿਵਾਸ ਹੁੰਦਾ ਹੈ,
جِسُ سِمرت سنّکٹ چھُٹہِ اند منّگل بِس٘رام 
خدا کو محبت اور عقیدت سے یاد کرنا ، پریشانیاں دور ہوجاتی ہیں اور انسان سکون اور خوشی میں رہتا ہے۔


ਨਾਨਕ ਜਪੀਐ ਸਦਾ ਹਰਿ ਨਿਮਖ  ਬਿਸਰਉ ਨਾਮੁ 
naanak japee-ai sadaa har nimakh na bisara-o naam. ||2||
O’ Nanak, always meditate on God, and don’t forget Him even for an instant. |2| ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਨੂੰ ਸਦਾ ਸਿਮਰੀਏਕਦੇ ਅੱਖ ਦੇ ਫੋਰ ਜਿਤਨੇ ਸਮੇ ਲਈ ਭੀ ਉਹ ਹਰਿਨਾਮ ਅਸਾਨੂੰ ਨਾਹ ਭੁੱਲੇ 
نانک جپیِۓَ سدا ہرِ نِمکھ ن بِسرءُ نامُ 2
اے نانک ، ہمیشہ خداوند کا مراقبہ کرو – ایک لمحہ کے لئے بھی اسے مت بھولنا۔


ਪਉੜੀ 
pa-orhee.
Pauree:
پئُڑی 
پیوری:
ਤਿਨ ਕੀ ਸੋਭਾ ਕਿਆ ਗਣੀ ਜਿਨੀ ਹਰਿ ਹਰਿ ਲਧਾ 
tin kee sobhaa ki-aa ganee jinee har har laDhaa.
How can I describe the glory of those who have realized God?
ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੇ ਰੱਬ ਨੂੰ ਲੱਭ ਲਿਆ ਹੈ ਉਹਨਾਂ ਦੀ ਵਡਿਆਈ ਬਿਆਨ ਨਹੀਂ ਕੀਤੀ ਜਾ ਸਕਦੀ
تِن کی سۄبھا کِیا گݨی جِنی ہرِ ہرِ لدھا 
میں ان لوگوں کی عظمت کو کس طرح بیان کرسکتا ہوں جنہوں نے خدا کو محسوس کیا؟


ਸਾਧਾ ਸਰਣੀ ਜੋ ਪਵੈ ਸੋ ਛੁਟੈ ਬਧਾ 
saaDhaa sarnee jo pavai so chhutai baDhaa.
One who seeks the refuge of the saints is released from worldly bonds.
ਜੋ ਮਨੁੱਖ ਉਹਨਾਂ ਗੁਰਮੁਖਾਂ ਦੀ ਸ਼ਰਨ ਆਉਂਦਾ ਹੈ ਉਹ ਮਾਇਆ ਦੇ ਬੰਧਨਾਂ ਵਿਚ ਬੱਝਾ ਹੋਇਆ ਮੁਕਤ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ 
سادھا سرݨی جۄ پوےَ سُ چھُٹےَ بدھا 
جو سنتوں کی پناہ مانگتا ہے اسے دنیاوی بندھنوں سے رہا کیا جاتا ہے۔


ਗੁਣ ਗਾਵੈ ਅਬਿਨਾਸੀਐ ਜੋਨਿ ਗਰਭਿ  ਦਧਾ 
gun gaavai abinaasee-ai jon garabh na daDhaa.
One who sings the praises of the imperishable God does not suffer in the cycles of birth and death).
ਜੋ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦਾ ਜੱਸ ਗਾਇਨ ਕਰਦਾ ਹੈਉਹ ਜੂਨਾਂ ਵਿਚ ਪੈ ਪੈ ਕੇ ਨਹੀਂ ਸੜਦਾ
گُݨ گاوےَ ابِناسیِۓَ جۄنِ گربھِ ن ددھا 
جو ن رب کی تسبیح گاتا ہے ، وہ دوبارہ جنم لینے کے رحم میں نہیں جلتا ہے


ਗੁਰੁ ਭੇਟਿਆ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮੁ ਹਰਿ ਪੜਿ ਬੁਝਿ ਸਮਧਾ 
gur bhayti-aa paarbarahm har parh bujh samDhaa.
He meets the Guru and by uttering and understanding the words of God’s praises, achieves eternal peace.
ਉਸ ਨੂੰ ਗੁਰੂ ਮਿਲ ਪੈਂਦਾ ਹੈਉਹ ਪ੍ਰਭੂ ਦੀ ਸਿਫ਼ਤਿਸਾਲਾਹ ਉਚਾਰ ਕੇ ਤੇ ਸਮਝ ਕੇ ਸ਼ਾਂਤੀ ਪ੍ਰਾਪਤ ਕਰਦਾ ਹੈ
گُرُ بھیٹِیا پارب٘رہمُ ہرِ پڑِ بُجھِ سمدھا 
وہ گرو سے ملتا ہے اور خدا کی حمد کے الفاظ بول اور سمجھنے سے ، ابدی سکون حاصل کرتا ہے۔


ਨਾਨਕ ਪਾਇਆ ਸੋ ਧਣੀ ਹਰਿ ਅਗਮ ਅਗਧਾ ੧੦
naanak paa-i-aa so Dhanee har agam agDhaa. ||10||
O’ Nanak, he has realized that Master, who is incomprensible and unfathomable.
ਹੇ ਨਾਨਕਉਸ ਮਨੁੱਖ ਨੇ ਅਥਾਹ ਤੇ ਅਪਹੁੰਚ ਮਾਲਕ ਹਰੀ ਨੂੰ ਪਾ ਲਿਆ ਹੈ 
نانک پائِیا سۄ دھݨی ہرِ اگم اگدھا  10 
نانک نے اس آقا کو حاصل کیا ہے ، جو ناقابل رسائ اور ناقابل سماعت ہے۔


ਸਲੋਕ   
salok mehlaa 5.
Salok, Fifth Guru:
سلۄک م: 5 
صلوک ، پانچواں گرو:
ਕਾਮੁ  ਕਰਹੀ ਆਪਣਾ ਫਿਰਹਿ ਅਵਤਾ ਲੋਇ 
kaam na karhee aapnaa fireh avtaa lo-ay.
O’ mortal, You are not doing your real task of meditating on God’s name, and you are wandering around aimlessly in the world.
(ਹੇ ਜੀਵ!) ਤੂੰ ਆਪਣਾ ਅਸਲ ਕੰਮ ਨਹੀਂ ਕਰਦਾ ਤੇ ਜਗਤ ਵਿਚ ਆਪਹੁਦਰਾ ਫਿਰ ਰਿਹਾ ਹੈਂ
کامُ ن کرہی آپݨا پھِرہِ اوتا لۄءِ 
O ’بشر ، آپ خدا کے نام پر غور کرنے کا اپنا اصل کام نہیں کر رہے ہیں ، اور آپ دنیا میں بے مقصد گھوم رہے ہیں۔


ਨਾਨਕ ਨਾਇ ਵਿਸਾਰਿਐ ਸੁਖੁ ਕਿਨੇਹਾ ਹੋਇ 
naanak naa-ay visaari-ai sukh kinayhaa ho-ay. ||1||
O’ Nanak, if God’s Name is forsaken, there can be no peace ||1||
ਹੇ ਨਾਨਕਜੇ ਪ੍ਰਭੂ ਦਾ ਨਾਮ ਵਿਸਾਰ ਦਿੱਤਾ ਜਾਏ ਤਾਂ ਕੋਈ ਭੀ ਸੁਖ ਨਹੀਂ ਹੋ ਸਕਦਾ 
نانک ناءِ وِسارِۓَ سُکھُ کِنیہا ہۄءِ ۔ 1
لوگ اپنے فرائض سرانجام نہیں دیتے ہیں ، بلکہ اس کے بجائے وہ بے مقصد گھومتے ہیں۔


  
mehlaa 5.
Salok, Fifth Guru:
م: 5 
صلوک ، پانچواں گرو:
ਬਿਖੈ ਕਉੜਤਣਿ ਸਗਲ ਮਾਹਿ ਜਗਤਿ ਰਹੀ ਲਪਟਾਇ 
bikhai ka-urhtan sagal maahi jagat rahee laptaa-ay.
The bitterness of the poisonous Maya is in all, and it has entrapped the entire world in its grip.
(ਮਾਇਆਜ਼ਹਿਰ ਦੀ ਕੁੱੜਤਣ ਸਾਰੇ ਜੀਵਾਂ ਵਿਚ ਹੈਜਗਤ ਵਿਚ ਸਭ ਨੂੰ ਚੰਬੜੀ ਹੋਈ ਹੈ
بِکھےَ کئُڑتݨِ سگل ماہِ جگتِ رہی لپٹاءِ 
زہریلی مایا کی تلخی سب میں ہے اور اس نے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے۔


ਨਾਨਕ ਜਨਿ ਵੀਚਾਰਿਆ ਮੀਠਾ ਹਰਿ ਕਾ ਨਾਉ 
naanak jan veechaari-aa meethaa har kaa naa-o. ||2||
O Nanak, it is only the devotees of God, who have thought over and concluded that it is only God’s Name which is sweet. ||2||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਸਿਰਫ਼ ਪ੍ਰਭੂ ਦੇਸੇਵਕ ਨੇ ਇਹ ਵਿਚਾਰ ਕੀਤੀ ਹੈ ਕਿ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦਾ ਨਾਮ ਹੀ ਮਿੱਠਾ ਹੈ 
نانک جنِ ویِچارِیا میِٹھا ہرِ کا ناءُ 2
اے نانک ، شائستہ انسان کو یہ احساس ہوگیا ہے کہ صرف خداوند کا نام ہی پیارا ہے۔


ਪਉੜੀ 
pa-orhee.
Pauree:
پئُڑی 
پیوری:
ਇਹ ਨੀਸਾਣੀ ਸਾਧ ਕੀ ਜਿਸੁ ਭੇਟਤ ਤਰੀਐ 
ih neesaanee saaDh kee jis bhaytat taree-ai.
This is the distinguishing sign of the Holy Saint, that by meeting with him and following his teachings, one is saved from the vices.
ਸਾਧੂ ਦੀ ਇਹ ਨਿਸ਼ਾਨੀ ਹੈ ਕਿ ਉਸ ਨੂੰ ਮਿਲਿਆਂ (ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਤੋਂ ਤਰ ਜਾਈਦਾ ਹੈ
اِہ نیِشاݨی سادھ کی جِسُ بھیٹت تریِۓَ 
یہ مقدس سینٹ کی امتیازی علامت ہے ، کہ اس سے مل کر اور اس کی تعلیمات پر عمل کرنے سے ، کوئی شخص برائیوں سے بچ جاتا ہے۔


ਜਮਕੰਕਰੁ ਨੇੜਿ  ਆਵਈ ਫਿਰਿ ਬਹੁੜਿ  ਮਰੀਐ 
jamkankar nayrh na aavee fir bahurh na maree-ai.
The Messenger of Death does not come near and we do not die again and again ਜਮਦੂਤਨੇੜੇ ਨਹੀਂ ਢੁਕਦਾ ਤੇ ਮੁੜ ਮੁੜ ਨਹੀਂ ਮਰੀਦਾ
جمکنّکرُ نیڑِ ن آوئی پھِرِ بہُڑِ ن مریِۓَ 
موت کا رسول قریب نہیں آتا اور ہم بار بار نہیں مرتے


ਭਵ ਸਾਗਰੁ ਸੰਸਾਰੁ ਬਿਖੁ ਸੋ ਪਾਰਿ ਉਤਰੀਐ 
bhav saagar sansaar bikh so paar utree-ai.
and we cross over the terrifying poisonous world-ocean of vices
ਜੋ ਜ਼ਹਿਰ ਰੂਪ ਸੰਸਾਰਸਮੁੰਦਰ ਹੈ ਇਸ ਤੋਂ ਪਾਰ ਲੰਘ ਜਾਈਦਾ ਹੈ
بھو ساگرُ سنّسارُ بِکھُ سۄ پارِ اُتریِۓَ 
اور ہم خوفناک دنیا کے خوفناک زہر پار کر رہے ہیں۔


ਹਰਿ ਗੁਣ ਗੁੰਫਹੁ ਮਨਿ ਮਾਲ ਹਰਿ ਸਭ ਮਲੁ ਪਰਹਰੀਐ 
har gun gufhu man maal har sabh mal parharee-ai.
So, enshrine the virtues of God in your mind, and all your filth of vices shall be washed away.
ਹੇ ਭਾਈਮਨ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ ਦੇ ਗੁਣਾਂ ਦੀ ਮਾਲਾ ਗੁੰਦੋਮਨ ਦੀ ਸਾਰੀ ਮੈਲ ਦੂਰ ਹੋ ਜਾਂਦੀ ਹੈ
ہرِ گُݨ گُنّپھہُ منِ مال ہرِ سبھ ملُ پرہریِۓَ 
لہذا ، خدا کی خوبیوں کو اپنے ذہن میں رکھو ، اور آپ کی تمام برائیوں کو ختم کردیا جائے گا۔


ਨਾਨਕ ਪ੍ਰੀਤਮ ਮਿਲਿ ਰਹੇ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਨਰਹਰੀਐ ੧੧
naanak pareetam mil rahay paarbarahm narharee-ai. ||11||
O’ Nanak, they who have enshrined the virtues of God in their mind, remain united with God.||11||
ਹੇ ਨਾਨਕ! (ਜਿਨ੍ਹਾਂ ਨੇ ਇਹ ਮਾਲਾ ਗੁੰਦੀ ਹੈਉਹ ਪਾਰਬ੍ਰਹਮ ਪਰਮਾਤਮਾ ਨੂੰ ਮਿਲੇ ਰਹਿੰਦੇ ਹਨ 
نانک پ٘ریِتم مِلِ رہے پارب٘رہم نرہریِۓَ  11 
اے نانک ، جن لوگوں نے اپنے دماغ میں خدا کی خوبیاں سمیٹی ہیں ، وہ خدا کے ساتھ متحد رہیں


ਸਲੋਕ   
salok mehlaa 5.
Salok, Fifth Guru:
سلۄک م: 5 
صلوک ، پانچواں گرو:
ਨਾਨਕ ਆਏ ਸੇ ਪਰਵਾਣੁ ਹੈ ਜਿਨ ਹਰਿ ਵੁਠਾ ਚਿਤਿ 
naanak aa-ay say parvaan hai jin har vuthaa chit.
O Nanak, approved is the advent of those into this world within whose consciousness God dwells.
ਹੇ ਨਾਨਕਜਿਨ੍ਹਾਂ ਮਨੁੱਖਾਂ ਦੇ ਚਿੱਤ ਵਿਚ ਪਰਮਾਤਮਾ  ਵੱਸਿਆ ਹੈ ਉਹਨਾਂ ਦਾ ਆਉਣਾ ਸਫਲ ਹੈ
نانک آۓ سے پرواݨُ ہےَ جِن ہرِ وُٹھا چِتِ 
اے نانک ، منظور ہے وہ لوگ جو اس دنیا میں داخل ہوچکے ہیں جن کے ہوش میں خدا رہتا ہے۔


ਗਾਲ੍ਹ੍ਹੀ ਅਲ ਪਲਾਲੀਆ ਕੰਮਿ  ਆਵਹਿ ਮਿਤ 
gaalHee al palaalee-aa kamm na aavahi mit. ||1||
O my friend, all other superfluous talks serves no purpose. ||1||
ਹੇ ਮਿੱਤਰਫੋਕੀਆਂ ਗੱਲਾਂ ਕਿਸੇ ਕੰਮ ਨਹੀਂ ਆਉਂਦੀਆਂ 
گال٘ہی ال پلالیِیا کنّمِ ن آوہِ مِت ۔ 1
اے دوست ، باقی تمام اضافی باتیں بے مقصد ہیں


  
mehlaa 5.
saloke, Fifth Guru:
م: 5 
سالوکی ، پانچویں گرو:
ਪਾਰਬ੍ਰਹਮੁ ਪ੍ਰਭੁ ਦ੍ਰਿਸਟੀ ਆਇਆ ਪੂਰਨ ਅਗਮ ਬਿਸਮਾਦ 
paarbarahm parabh daristee aa-i-aa pooran agam bismaad.
The incomprehensible and wonderful God has become evident to him pervading everywhere.
ਉਸ ਮਨੁੱਖ ਨੂੰ ਅਪਹੁੰਚ ਤੇ ਅਚਰਜਰੂਪ ਪ੍ਰਭੂ ਹਰ ਥਾਂ ਮੌਜੂਦ ਦਿੱਸ ਪਿਆ ਹੈ,
پارب٘رہمُ پ٘ربھُ د٘رِسٹی آئِیا پۄُرن اگم بِسماد 
میں خدائے کامل خدا ، کامل ، ناقابل رسائی ، حیرت انگیز رب سے ملنے آیا ہوں۔