Urdu-Raw-Page-6

ਆਖਹਿ ਗੋਪੀ ਤੈ ਗੋਵਿੰਦ ॥
aakhahi gopee tai govind.
Krishna (Hindu Deity) and his devotees (gopis) sing His praises.
ਗੋਪੀਆਂ ਤੇ ਕਈ ਕਾਨ੍ਹ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦਾ ਅੰਦਾਜ਼ਾ ਲਾਂਦੇ ਹਨ।
آکھہِگوپیِتےَگوۄِنّد
گوبند ۔کاہن ۔ کرشن ۔
۔ گوپی اور کاہن کرشن تیرے ہی گن گاتے ہیں۔

ਆਖਹਿ ਈਸਰ ਆਖਹਿ ਸਿਧ ॥
aakhahi eesar aakhahi siDh.
Shiva (Hindu Deity) and siddhas (people with supernatural powers) praise Him.
ਕਈ ਸ਼ਿਵ ਤੇ ਸਿੱਧ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੀ ਵਡਿਆਈ ਆਖਦੇ ਹਨ।
آکھ ایِسرآکھہِسِدھ॥
تعرئف کرتا ہے شیوجی تیری ۔ آکہہ سدھ ۔ سھد بھی گن گاتے ہیں ۔
حمد کرتا ہے شو جی تیری سدھ بھی تجھے ہی بتاتے ہیں

ਆਖਹਿ ਕੇਤੇ ਕੀਤੇ ਬੁਧ ॥
aakhahi kaytay keetay buDh.
Many intellectuals, created by Him praise Him.
ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੇ ਪੈਦਾ ਕੀਤੇ ਹੋਏ ਬੇਅੰਤ ਬੁੱਧ ਉਸ ਦੀ ਵਡਿਆਈ ਆਖਦੇ ਹਨ।
آکھہِکیتےکیِتےبُدھ॥
بدھ ۔ بودھی۔ دانشور ۔
اور گن گاتے ہیں جتنے ۔ بودھی ۔دانشور ہوتے ہیں تیرے ہی گن گاتے ہیں

ਆਖਹਿ ਦਾਨਵ ਆਖਹਿ ਦੇਵ ॥
aakhahi daanav aakhahi dayv.
The demons admire Him; the deities admire Him.
ਰਾਖਸ਼ ਤੇ ਦੇਵਤੇ (ਵੀ) ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦੀ ਵਡਿਆਈ ਆਖਦੇ ਹਨ।
آکھہِدانۄآکھہِدیۄ॥
دانو۔ دیؤ۔دیو ۔فرشتے ۔
دیوتے اور فرشتے سارے وانو بھی تیری شان بتاتے ہیں

ਆਖਹਿ ਸੁਰਿ ਨਰ ਮੁਨਿ ਜਨ ਸੇਵ ॥
aakhahi sur nar mun jan sayv.
Many godly men, holy saints and their followers sing His praises.
ਦੇਵਤਾ-ਸੁਭਾਉ ਮਨੁੱਖ, ਮੁਨੀ ਲੋਕ ਤੇ ਸੇਵਕ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦਾ ਅੰਦਾਜ਼ਾ ਲਾਂਦੇ ਹਨ।
آکھہِسُرِنرمُنِجنسیۄ
نر ۔انسان۔سر ۔فرشتے ۔من ۔ مانے ہوئے عاشقان الہّٰی ۔درویش ۔ عارف ۔ سیو ۔ خادم ۔
اور خادم بھی تجھ میں دھیان لگاتے ہیں۔

ਕੇਤੇ ਆਖਹਿ ਆਖਣਿ ਪਾਹਿ ॥
kaytay aakhahi aakhan paahi.
Many praises Him and try to describe Him.
ਬੇਅੰਤ ਜੀਵ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਦਾ ਅੰਦਾਜ਼ਾ ਲਾ ਰਹੇ ਹਨ, ਅਤੇ ਬੇਅੰਤ ਹੀ ਲਾਉਣ ਦਾ ਜਤਨ ਕਰ ਰਹੇ ਹਨ।
کیتےآکھہِآکھنھِپاہِ॥
کیتے۔ کتنے ہی ۔آکھن پا ہے۔ کہنے کی کوشش کرتے ہیں
تیری صِفت صلاح کرنیکی کتنے ہی کوشش کرتے ہیں

ਕੇਤੇ ਕਹਿ ਕਹਿ ਉਠਿ ਉਠਿ ਜਾਹਿ ॥
kaytay kahi kahi uth uth jaahi.
Many have spoken of Him over and over again, and have departed.
ਬੇਅੰਤ ਜੀਵ ਅੰਦਾਜ਼ਾ ਲਾ ਲਾ ਕੇ ਇਸ ਜਗਤ ਤੋਂ ਤੁਰੇ ਜਾ ਰਹੇ ਹਨ।
کیتےکہِکہِاُٹھِاُٹھِجاہِ॥
۔اُٹھ اُٹھ جا ہے ۔ چلے جاتے ہیں ۔اِس عالم سے ۔
کتنے ہی حمد و ثناہ کرتے کرتے اِس جہاں سے چلے جاتے ہیں

ਏਤੇ ਕੀਤੇ ਹੋਰਿ ਕਰੇਹਿ ॥
aytay keetay hor karayhi.
If He were to create as many more as He already has and everybody tried,
ਜਗਤ ਵਿਚ ਇਤਨੇਜੀਵ ਪੈਦਾ ਕੀਤੇ ਹੋਏ ਹਨ,ਪਰ ਹੇ ਹਰੀ! ਜੇ ਤੂੰ ਹੋਰ ਭੀ ਬੇਅੰਤ ਜੀਵ ਪੈਦਾ ਕਰ ਦੇਵੇਂ,
ایتےکیِتےہورِکریہِ॥
ایتے کیتے ۔جتنی مخلوقات ہوئی ہے پیدا۔ ہورکر پہہ ۔ اگر اتنے ہی اور ہوں پیدا ۔
تیری جتنی مخلوقات ہوئی ہے اتنی ہی گر اور جہان ہیں

ਤਾ ਆਖਿ ਨ ਸਕਹਿ ਕੇਈ ਕੇਇ ॥
taa aakh na sakahi kay-ee kay-ay.
even then all His virtues could not be described.
ਤਾਂ ਭੀ ਕੋਈ ਜੀਵ ਤੇਰਾ ਅੰਦਾਜ਼ਾ ਨਹੀਂ ਲਾ ਸਕਦੇ।
تاآکھِنسکہِکیئیِکےءِ
تا تب ۔سکہ ۔ نہیں کہہ سکتا ۔اتنے اوصاف ۔
اتنے اوصاف خدا ہیں تیرے گن سکتی ہےمخلو ق کہاں۔

ਜੇਵਡੁ ਭਾਵੈ ਤੇਵਡੁ ਹੋਇ ॥
jayvad bhaavai tayvad ho-ay.
He is as Great as He wishes to be.
ਪਰਮਾਤਮਾ ਜਿਤਨਾ ਚਾਹੁੰਦਾ ਹੈ ਉਤਨਾ ਹੀ ਵੱਡਾ ਹੋ ਜਾਂਦਾ ਹੈ (ਆਪਣੀ ਕੁਦਰਤ ਵਧਾ ਲੈਂਦਾ ਹੈ)।
جیۄڈُبھاۄےَتیۄڈُہوءِ
جیوڈ ۔ جتنا بڑا۔بھاوے ۔ چاہتا ہے ۔تیوڈ ۔اُتنا بڑا ۔
جتنی عظمت اور شان ہے چاہتا اُتنی ہی شان و حشمت ہے

ਨਾਨਕ ਜਾਣੈ ਸਾਚਾ ਸੋਇ ॥
naanak jaanai saachaa so-ay.
O’ Nanak, only He, the True God knows how great He is.
ਹੇ ਨਾਨਕ! ਉਹ ਸਦਾ-ਥਿਰ ਰਹਿਣ ਵਾਲਾ ਹਰੀ ਆਪ ਹੀ ਜਾਣਦਾ ਹੈ (ਕਿ ਉਹ ਕੇਡਾ ਵੱਡਾ ਹੈ)।
نانکجانھےَساچاسوءِ
ساچاسوئے ۔ وہ سچا خدا ہے ۔
نانک سچا خود ہی سمجھتا ہے اپنی شان اَور بڑائی

ਜੇ ਕੋ ਆਖੈ ਬੋਲੁਵਿਗਾੜੁ ॥
jay ko aakhai boluvigaarh.
If anyone claims to be able to describe God,
ਜੇ ਕੋਈ ਬੜਬੋਲਾ ਮਨੁੱਖ ਦੱਸਣ ਲੱਗੇ (ਕਿ ਅਕਾਲ ਪੁਰਖ ਕਿਤਨਾ ਵੱਡਾ ਹੈ),
جےکوآکھےَبولُۄِگاڑُ॥
بول وگاڑ۔ بولوں سے وگاڑنے والا ۔
بدکار اور گنوار اُسکو کہنا چاہتا ہے

ਤਾ ਲਿਖੀਐ ਸਿਰਿ ਗਾਵਾਰਾ ਗਾਵਾਰੁ ॥੨੬॥
taa likee-ai sir gaavaaraa gaavaar. ||26||
consider him as the most ignorant person. ||26||
ਤਾਂ ਉਹ ਮਨੁੱਖ ਮੂਰਖਾਂ-ਸਿਰ-ਮੂਰਖ ਗਿਣਿਆ ਜਾਂਦਾ ਹੈ
تالِکھیِئےَسِرِگاۄاراگاۄارُ
۔سرگاوار گوار ۔ مورکھوں کا مورکہہ۔ جاہل ۔
گو گنوار تو ہے ہی اعلٰے گنوار بھی ہے

Stanza 27
This stanza displays a vision of God’s creation and His might. It states that there is a perfect harmony across the whole creation. Everything is under His command and it is functioning by His Will. Mystically speaking, it gives a feeling that the whole universe is singing His praises.
اس پیرا میں خدا کی خلقت اور اس کی طاقت کا نظارہ ہوتا ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ پوری مخلوق میں مکمل ہم آہنگی ہے۔ ہر چیز اس کے حکم کے تابع ہے اور اس کی مرضی سے کام کر رہی ہے۔ صوفیانہ لحاظ سے بات کی جائے تو ایک احساس ہوتا ہے کہ پوری کائنات اس کی تعریف گاتی ہے۔

ਸੋ ਦਰੁ ਕੇਹਾ ਸੋ ਘਰੁ ਕੇਹਾ ਜਿਤੁ ਬਹਿ ਸਰਬ ਸਮਾਲੇ ॥
so dar kayhaa so ghar kayhaa jit bahi sarab samaalay.
O’ God, what kind of abode can there be, from where You are taking care of Your creation (since you are everywhere)?
سودرُکیہاسوگھرُکیہاجِتُبہِسربسمالے
کیہا ۔ کیا ہے ۔جت ۔جس میں ۔بیہہ ۔بیٹھ کر ۔سرب ۔ سب کو ۔سمالے ۔ خبر گیری کرتا ہے ۔
کیا ہے در اور گھیر ۔ جس میں بیٹھا سب کی کرتا ہے جزگیری

ਨਾਦ ਅਨੇਕ ਅਸੰਖਾ ਕੇਤੇ ਵਾਵਣਹਾਰੇ ॥
vaajay naad anayk asankhaa kaytay vaavanhaaray.
In your creation, countless kinds of celestial music is being sung for you, producing countless melodies.
ۄاجےنادانیکاسنّکھاکیتےۄاۄنھہارے
ناد آواز ۔ واو نہارے ۔ بجاؤن والے۔
۔ جہاں بجتے ہیں ناد اَور سنکھ اور کتنے ہی ساز بجاتے ہیں۔ اور کتنے ہی ساز بجاتے ہیں
کیتےراگپریِسِءُکہیِئنِکیتےگاۄنھہارے
پری سیؤ موراگنیاں ۔ کہن ۔کہتے ہیں
اورکتنے گانے والے ہیں کتنے ہی راگ اور راگنیاں ہیں

ਗਾਵਹਿ ਤੁਹਨੋ ਪਉਣੁ ਪਾਣੀ ਬੈਸੰਤਰੁ ਗਾਵੈ ਰਾਜਾ ਧਰਮੁ ਦੁਆਰੇ ॥
gaavahi tuhno pa-un paanee baisantar gaavai raajaa Dharam du-aaray.
The winds, the seas, the rainfalls, the fires are all singing your praises by the sounds they produce. The Righteous Justice also is singing your praises.
گاۄہِتُہنوپئُنھُپانھیِبیَسنّترُگاۄےَراجادھرمُدُیارے
تہنو ۔ تجہے۔وینتر ۔ آگ۔ راجادھرم ۔ فرشتہ انصاف
اے خدا تجھے ۔ ہوا ۔ پانی آگ تیری حمد ثناء کر رہی ہے ۔فرشتہ انصاف الہٰی بھی تیری حمد وثناء میں مصروف ہے

ਗਾਵਹਿ ਚਿਤੁ ਗੁਪਤੁ ਲਿਖਿ ਜਾਣਹਿ ਲਿਖਿ ਲਿਖਿ ਧਰਮੁ ਵੀਚਾਰੇ ॥
gaavahi chit gupat likh jaaneh likh likh Dharam veechaaray.
Chitr and Gupt, the mythical angels, who keep the record of actions, and the Righteous Judge of Dharma who reads this record, are all singing of You.
گاۄہِچِتُگُپتُلِکھِجانھہِلِکھِلِکھِدھرمُۄیِچارے
۔ چتر گپت ۔ اعمالنا مہ ۔ تحریر کرنیوالے الہٰی جاسوس ۔
۔جاسوسان تحریر گند گان اعمال بھی تیرے در پر تیری تعریف کر رہے ہیں ۔جنکو فرشتہ انصاف ۔ غور وخوض کرتا ہے ۔تیرے ہی گن گا رہے ہیں۔

ਗਾਵਹਿ ਈਸਰੁ ਬਰਮਾ ਦੇਵੀ ਸੋਹਨਿ ਸਦਾ ਸਵਾਰੇ ॥
gaavahi eesar barmaa dayvee sohan sadaa savaaray.
Shiva, Brahma and the goddess of Beauty (Hindu deities) always shining in Your splendor are also singing Your praises.
گاۄہِایِسرُبرمادیۄیِسوہنِسداسۄارے
ایسر ۔ شوجی۔برہما ۔برہما ۔سوہن ۔ اچھے لگے ہیں
شوجی ۔ برہما اَور دیوی کرتے ہیں تیری ہی حمد و ثناہ جنہیں تو نے سنوار ا ہے

ਗਾਵਹਿ ਇੰਦ ਇਦਾਸਣਿ ਬੈਠੇ ਦੇਵਤਿਆ ਦਰਿ ਨਾਲੇ ॥
gaavahi ind idaasan baithay dayviti-aa dar naalay.
Indra (Hindu Deity) seated on his magnificent throne, along with other gods and goddesses are admiring You in an imploring manner.
گاۄہِاِنّداِداسنھِبیَٹھےدیۄتِیادرِنالے
تحت پر بیٹھا اندر دیوتا مؤدیوتے تیرے ہی گن گاتا ہے ۔

ਗਾਵਹਿ ਸਿਧ ਸਮਾਧੀ ਅੰਦਰਿ ਗਾਵਨਿ ਸਾਧ ਵਿਚਾਰੇ ॥
gaavahi siDh samaaDhee andar gaavan saaDh vichaaray.
Siddhas (Holy men with spiritual powers) are praising You imploringly in deep meditation; Saints are also singing of You in deep contemplation.
گاۄہِسِدھسمادھیِانّدرِگاۄنِسادھۄِچارے
سدھ ۔ پاکیزہ ۔ پاکدامن۔ سمادھی ۔ دھیان الہٰی۔سادھ ۔ وہ انسان جنہوں نے اپنا اخلاق پاک بنا لیا
گاتے ہیں خدا تجھے سدھ سما دھی میں ۔ساد ہو بھی کر سوچ رچا تیرے گن گاتے ہیں

ਗਾਵਨਿ ਜਤੀ ਸਤੀ ਸੰਤੋਖੀ ਗਾਵਹਿ ਵੀਰ ਕਰਾਰੇ ॥
gaavan jatee satee santokhee gaavahi veer karaaray.
The self-disciplined, the philanthropists, the contented and the fearless, all are singing Your praises imploringly.
گاۄنِجتیِستیِسنّتوکھیِگاۄہِۄیِرکرارے
۔ سچیار۔ جتی ۔ برہمچاری ۔ جو دیرج کا غلط استعمال نہیں کرتا۔ ستی ۔ سچ پر چلنے والا۔ سنتوکھی ۔ صابر۔ویر کرارے ۔ بہت بہادر ۔
۔ گاتے ہیں جب ست والے صابر اور بہت بہادر گاتے ہیں۔

ਗਾਵਨਿ ਪੰਡਿਤ ਪੜਨਿ ਰਖੀਸਰ ਜੁਗੁ ਜੁਗੁ ਵੇਦਾ ਨਾਲੇ ॥
gaavan pandit parhan rakheesar jug jug vaydaa naalay.
The pandits and the spiritually knowledgeable who for ages have been reading the vedas, are singing Your praises.
گاۄنِپنّڈِتپڑنِرکھیِسرجُگُجُگُۄیدانالے
رکھیسر ۔ جنہوں نے جڑواحساسات پر ضبط حاصل کر لی ہے ۔ ۔
گاتے ہیں پنڈت اَور رستی بھی دیدوں کو جو پڑہتے ہیں

ਗਾਵਹਿ ਮੋਹਣੀਆ ਮਨੁ ਮੋਹਨਿ ਸੁਰਗਾ ਮਛ ਪਇਆਲੇ ॥
gaavahi mohnee-aa man mohan surgaa machh pa-i-aalay.
The beautiful fascinating entrappers in heaven, on earth and in nether worlds are singing Your praises imploringly.
گاۄہِموہنھیِیامنُموہنِسُرگامچھپئِیالے
سرگاں ۔ جنت۔ مچھ ۔ یہ عالم ۔پیالے ۔ پاتال ۔ زیر زمین
گاتی ہیں حوریں جو دل کو موہ لیتی ہیں۔ جنت اور زمین آسمانوں میں ۔

ਗਾਵਨਿ ਰਤਨ ਉਪਾਏ ਤੇਰੇ ਅਠਸਠਿ ਤੀਰਥ ਨਾਲੇ ॥
gaavan ratan upaa-ay tayray athsath tirath naalay.
The precious objects, and all the holy places of pilgrimage, created by you seem to be singing Your praises.
گاۄنِرتناُپاۓتیرےاٹھسٹھِتیِرتھنالے
رتن ۔قیمتی پتھر ۔زمرود۔ ہیرے وغیرہ ۔
جتنے رتن کے لئے نہیں پیدا ۔ اَور اَٹھ سٹھ تیرتھ بھی تیرے ہی گن گاتے ہیں

ਗਾਵਹਿ ਜੋਧ ਮਹਾਬਲ ਸੂਰਾ ਗਾਵਹਿ ਖਾਣੀ ਚਾਰੇ ॥
gaavahi joDh mahaabal sooraa gaavahi khaanee chaaray.
Themighty warriors, the saints with great spiritual powers and the creatures from all the four sources of life are singing Your praises.
گاۄہِجودھمہابلسوُراگاۄہِکھانھیِچارے
جودھ مہابل سورا ۔ بھاری طاقت والے بہادر جنگجو ۔کھانی ۔ کانیں
جنگجو ۔ طاقتور بہادر ۔اَور چاروں کانیں تیری ستائش کرتی ہیں

ਗਾਵਹਿ ਖੰਡ ਮੰਡਲ ਵਰਭੰਡਾ ਕਰਿ ਕਰਿ ਰਖੇ ਧਾਰੇ ॥
gaavahi khand mandal varbhandaa kar kar rakhay Dhaaray.
Countless continents, solar systems and galaxies created and supported by You, are singing of You (functioning flawlessly under Your command).
گاۄہِکھنّڈمنّڈلۄربھنّڈاکرِکرِرکھےدھارے
انڈج ۔ جیرج ۔ سہتج ۔ کھنڈ ۔ زمین کا ٹکرا ۔منڈل ۔ براعظم ۔وربھنڈا سارا عالم ۔دھارے جنہیں باندھ رکھا ہے ۔
تیرے خطے اَور براعظم اَور دنیا میں بھی گافی ہیں

ਸੇਈ ਤੁਧੁਨੋ ਗਾਵਹਿ ਜੋ ਤੁਧੁ ਭਾਵਨਿ ਰਤੇ ਤੇਰੇ ਭਗਤ ਰਸਾਲੇ ॥
say-ee tuDhuno gaavahi jo tuDh bhaavan ratay tayray bhagat rasaalay.
Only those can sing your praises who are pleasing to You and are truly devoted and imbued with Your love.
سیئیِتُدھُنوگاۄہِجوتُدھُبھاۄنِرتےتیرےبھگترسالے
سیئ۔ وہی ۔ بھاون ۔ جنہیں تو چاہتا ہے۔ رسالےجو تیر لطف لیتے ہیں ۔جو تجھ سے محظوظ ہیں
گائے تجھے وہی جو تیرے دل کو بھاتے ہیں ۔جو تیرے عاشق ہیں

ਹੋਰਿ ਕੇਤੇ ਗਾਵਨਿ ਸੇ ਮੈ ਚਿਤਿ ਨ ਆਵਨਿ ਨਾਨਕੁ ਕਿਆ ਵੀਚਾਰੇ ॥
hor kaytay gaavan say mai chit na aavan naanak ki-aa veechaaray.
O’ Nanak, so many others sing of You and they do not even come to my mind. How can I describe them all?
ہورِکیتےگاۄنِسےمےَچِتِنآۄنِنانکُکِیاۄیِچارے
۔ چت نہ آون۔ جو میرے یاداشت میں نہیں۔
گائے تو نانک اَور بھی ہیں ذہن میں کب آتے ہیں

ਸੋਈ ਸੋਈ ਸਦਾ ਸਚੁ ਸਾਹਿਬੁ ਸਾਚਾ ਸਾਚੀ ਨਾਈ ॥
so-ee so-ee sadaa sach saahib saachaa saachee naa-ee.
He and only He (God) exists forever. That Master is existentially True and His greatness is everlasting.
سوئیِسوئیِسداسچُساہِبُساچاساچیِنائیِ
سوئی سوئی ۔ وہی وہی۔ سچ صاحب ۔ سچا آقا ۔ساچی نائی ۔ جسکی سچی نامور اور شہر ہے
۔ وہ سچا مالک ہے اُسکی عظمت ۔ نیک نامی ناموری اور شہر ت اچھی ہے۔

ਹੈ ਭੀ ਹੋਸੀ ਜਾਇ ਨ ਜਾਸੀ ਰਚਨਾ ਜਿਨਿ ਰਚਾਈ ॥
hai bhee hosee jaa-ay na jaasee rachnaa jin rachaa-ee.
He who has created this universe is present now and will always be present. Neither He was born nor He shall die.
ہےَبھیِہوسیِجاءِنجاسیِرچناجِنِرچائیِ
۔ ہے بھی ۔ آج بھی ہے۔ ہوسی۔ آئندہ بھی ہوگا۔ جائے نہ جاسی ۔ جو مٹنے والا نہیں صدیو ی ہے ۔رچناجن رچائی ۔ جس نے یہ عالم پیدا کیا ہے ۔
جس الّٰلہ تعالیٰ نے یہ عالم پیدا کیا ہے وہ ا ب بھی ۔آئندہ بھی ہوگا ہمیشہ رہے گا

ਰੰਗੀ ਰੰਗੀ ਭਾਤੀ ਕਰਿ ਕਰਿ ਜਿਨਸੀ ਮਾਇਆ ਜਿਨਿ ਉਪਾਈ ॥
rangee rangee bhaatee kar kar jinsee maa-i-aa jin upaa-ee.
He has created Maya (worldly illusion) of various colors, species and varieties.
رنّگیِرنّگیِبھاتیِکرِکرِجِنسیِمائِیاجِنِاُپائیِ
رنگی رنگی ۔ کتنے ہی رنگوں والی ۔بھاتی ۔ طرح طرح کی ۔جنسی۔ کتنے ذاتوں والی ۔جن اُپائی جسنے پیدا کی ہے ۔
طرح طرح کے رنگوں والی طرح طرح کی قسموں والی ۔ مائیا جس نے کی ہے پیدا

ਕਰਿ ਕਰਿ ਵੇਖੈ ਕੀਤਾ ਆਪਣਾ ਜਿਵ ਤਿਸ ਦੀ ਵਡਿਆਈ ॥
kar kar vaykhai keetaa aapnaa jiv tis dee vadi-aa-ee.
Having made the creation, He watches over it with His Greatness.
کرِکرِۄیکھےَکیِتاآپنھاجِۄتِسدیِۄڈِیائیِ
کرکر دیکھے ۔ پیدا کرکے خبرگیری کرتا ہے ۔وڈیائی ۔ عظمت ۔بذرگی ۔
۔ کرلے خبرگیری وہ کرتا ہے آپ بنا اور آپ ہی دیکھے یہی اُسکی عظمت ہے۔

ਜੋ ਤਿਸੁ ਭਾਵੈ ਸੋਈ ਕਰਸੀ ਹੁਕਮੁ ਨ ਕਰਣਾ ਜਾਈ ॥
jo tis bhaavai so-ee karsee hukam na karnaa jaa-ee.
He does whatever pleases Him. Nobody can order Him what to do.
جوتِسُبھاۄےَسوئیِکرسیِہُکمُنکرنھاجائیِ
حکم نہ کرنا جائی ۔ اُسے حکم نہیں دیا جا سکتا
جو چاہتا ہے وہ کرتا ہے اُس پر حکم نہ کسی کا چلتا ہے

ਸੋ ਪਾਤਿਸਾਹੁ ਸਾਹਾ ਪਾਤਿਸਾਹਿਬੁ ਨਾਨਕ ਰਹਣੁ ਰਜਾਈ ॥੨੭॥
so paatisaahu saahaa paatisaahib naanak rahan rajaa-ee. ||27||
He is the King of kings, the Supreme One; O’ Nanak, it is imperative to live according to His will. ||27||
سوپاتِساہُساہاپاتِساہِبُنانکرہنھُرجائی
۔ رجائی ۔ رضا میں
شاہوں کا وہ شاہ ہے نانک اپنی رضا میں رہتا ہے

Stanza 28
This stanza discredits the ritualistic and meaningless practices used by those supposedly on the spiritual path. The outward appearance is not important. To progress spiritually, you need to inculcate qualities such as purity of mind, faith in the Almighty, and belief in universal brotherhood. These are the qualities that make a Yogi.
اس پیرا گراف میں ظاہری اور فرضی طور پر روحانیت پر عمل پیرا ان لوگوں پر تنقید کی گئی ہے جو بے معنی اور فضول قسم کی عادات اپنائے ہوئے ہیں۔ ظاہری شکل و شباہت کی کوئی اہمیت نہیں ہے۔ روحانی ارتقا کے لئے آپ کو ذہن کی پاکیزگی ، خداتعالیٰ پر ایمان ، اور آفاقی بھائی چارے پر یقین جیسی خصوصیات پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ وہ خصوصیات ہیں جو انسان کو یوگی بناتی ہیں۔

ਮੁੰਦਾ ਸੰਤੋਖੁ ਸਰਮੁ ਪਤੁ ਝੋਲੀ ਧਿਆਨ ਕੀ ਕਰਹਿ ਬਿਭੂਤਿ ॥
munda santokh saram pat jholee Dhi-aan kee karahi bibhoot.
O’ yogi, make contentment your earrings, hard work your begging bowl and sack. Make meditation on Naam the ashes that cover your body.
مُنّداسنّتوکھُسرمُپتُجھولیِدھِیانکیِکرہِبِبھوُتِ
مُندا ۔ مندراں ۔ کانوں کی کابڑی بالیا ں ۔سنتوکھ صبر۔ سرم۔جہد ۔ کوشش ۔پت عزت ۔دھیان کی کرپہہ ببھوت الہّٰی دھیان تیری جسم پر لگانے والی راکہہ ۔
آپ جوگی سے مخاطب نہیں کہ حقیقی لوگ اور یوگی ایسا ہونا چاہیے ۔ جسے جہد و شاعت کو مندریں سمجھے ۔ عزت کی اُسکی بھیک مانگنے والی ہواُسکی ۔ خدا میں دھیان لگانا اُسکے لئے راکھ کی ببھوت ہوا

ਖਿੰਥਾ ਕਾਲੁ ਕੁਆਰੀ ਕਾਇਆ ਜੁਗਤਿ ਡੰਡਾ ਪਰਤੀਤਿ ॥
khinthaa kaal ku-aaree kaa-i-aa jugat dandaa parteet.
Let the awareness of mortality be your patched coat; a high moral character be your way of life and faith in God be your walking stick.
کھِنّتھاکالُکُیاریِکائِیاجُگتِڈنّڈاپرتیِتِ
کھنتھا ۔ گودڑی ۔ کوآری کائیا ۔ پاک بدن ۔ کنواری لڑکی جیسا۔ جگت ۔طریقہ ۔پرتیت یقین ۔
کنواری لڑکی جیسا ہو پاک بدن موت کا خوب تیری کتنی ہو یا گودڑی ۔صدق اور یقین ہو جوگیوں والا ڈنڈا۔ سب مذہبوں کو تو اپنا مذہب سمجھے ۔یہی جوگی کا فرض سمجھ ہو۔

ਆਈ ਪੰਥੀ ਸਗਲ ਜਮਾਤੀ ਮਨਿ ਜੀਤੈ ਜਗੁ ਜੀਤੁ ॥
aa-ee panthee sagal jamaatee man jeetai jag jeet.
Let universal brotherhood be your sect; controlling your temptations is the real way to conquer your mind and soul.
آئیِپنّتھیِسگلجماتیِمنِجیِتےَجگُجیِتُ
آئی پنتھی ۔ اونچے در بے والا جوگیوں کا فرقہ ، سگل جماتی ۔ سب کو ایک جیسا سمجھ۔ من جیتے جگ جیت ۔ من پر قابوپانا ۔ سارے عالم کو فتح کرنا ہے
جو سب کو ایک سمجھے آئی پنتھی ہے وہی جس نے اپنے من کو جیت لیا جیت لیا سنسار اُس نے

ਆਦੇਸੁ ਤਿਸੈ ਆਦੇਸੁ ॥
aadays tisai aadays.
I bow to Him, I humbly bow.
آدیسُتِسےَآدیسُ
۔ آدیس ۔ سلام ۔پیغام۔
آداب اُسے سلام اُسے جو آدی ہے

ਆਦਿ ਅਨੀਲੁ ਅਨਾਦਿ ਅਨਾਹਤਿ ਜੁਗੁ ਜੁਗੁ ਏਕੋ ਵੇਸੁ ॥੨੮॥
aad aneel anaad anaahat jug jug ayko vays. ||28||
He is ever existent, immaculate, without beginning, without end, and unchanging through the ages. ||28||
آدِانیِلُانادِاناہتِجُگُجُگُایکوۄیسُ
آد شروع ۔آغاز ۔انیل ۔پاک ۔اناد۔ ازل ۔اناہت ۔لافناہجگ جگ ایکو ویس۔ابدی ۔
انا دی اور ابدی ہے ۔اور ہے پاک وہی ہر وور میں ایک جیسا ہے

Stanza 29
In this stanza, the Guru advises us how to walk the spiritual path as he refers to a ritual performed by yogis in India.
The ritual is that the yogis prepare food, assign a person to distribute it and play a drum to create ‘holy’sound while eating.
The Guru’s advice is to develop faith in the divine wisdom that God is all-pervading and let this faith be the food you prepare; let kindness for all be your dispenser and make every heartbeat your holy sound. The message here is that one should always remember that God is everywhere and be kind and considerate to all.
اس پیرا میں گرو ہمیں مشورہ دیتے ہیں کہ روحانی راہ پر کیسے چلنا ہے کیونکہ وہ ہندوستان میں یوگیوں کی ادا کردہ رسموں سے واقف تھے۔
رسم یہ ہے کہ یوگی کھانا تیار کرے،پھر تقسیم کرنے کے لیے کسی کے حوالے کرے اور کھانا کھاتے ہوئے ’مقدس‘ آواز پیدا کرنے کے لئے ڈھول بجائے۔
گرو کا مشورہ یہ ہے کہ خدائی حکمت پر یقین پیدا کریں کہ خدا ہر طرف پھیل رہا ہے۔ جو کھانا آپ بنا رہے ہو وہ تمھارا ایمان ہونا چاہئے،شفقت تمھاری صفائی کرنے والی ہو،اور دل کی ہر دھڑکن مقدس آواز ہو۔ یہاں پیغام یہ ہے کہ ہمیشہ یہ یاد رکھنا چاہئے کہ خدا ہر جگہ ہے اور سب کے ساتھ نرمی رکھے اور سب کا خیال رکھے۔

ਭੁਗਤਿ ਗਿਆਨੁ ਦਇਆ ਭੰਡਾਰਣਿ ਘਟਿ ਘਟਿ ਵਾਜਹਿ ਨਾਦ ॥
bhugat gi-aan da-i-aa bhandaaran ghat ghat vaajeh naad.
O’ Yogi, Let the spiritual wisdom that God is all-pervading be the food you prepare; let compassion be your distributor of the food and let the vibration of divine music in every heart be the drum you use to create sound.
بھُگتِگِیانُدئِیابھنّڈارنھِگھٹِگھٹِۄاجہِناد
بھگت گیان ۔ علم ہو کھانا۔رحم ۔کھانا ۔بانٹنے والا ۔گھٹ گھٹ ۔ ہر دل میں ۔
اے جوگی علم و سمجھ اپنا کھانا بنالے ۔رحم کھانا بانٹنے والا ہو ہر دل میں بسے کلام الہّٰی وہ تیری کار گذاری ہو

ਆਪਿ ਨਾਥੁ ਨਾਥੀ ਸਭ ਜਾ ਕੀ ਰਿਧਿ ਸਿਧਿ ਅਵਰਾ ਸਾਦ ॥
aap naath naathee sabh jaa kee riDh siDh avraa saad.
The Creator Himself is the supreme master of everybody and all His creation is under His control. Indulgence in performing miracles and seeking other pleasures are diversions that take you away from Him.
آپِناتھُناتھیِسبھجاکیِرِدھِسِدھِاۄراساد
ناد شبد ۔ کلام۔ آپ ناتھ ۔ مالک ۔ناتھی سب جاکی ۔ جسکی سب ملکیت ہے ۔ردھ۔عظمتیں۔ سدھ۔ جنہوں نے اپنے آپ کو پاک بنالیا ۔
مالکتیرا آپ خدا ہے ۔ جس کی ملکیت خلقت ساری ہے ۔دولت ۔ زور اَور کرامت۔ یہ دُوسروں سے محبت اَور ساتھ ہے

ਸੰਜੋਗੁ ਵਿਜੋਗੁ ਦੁਇ ਕਾਰ ਚਲਾਵਹਿ ਲੇਖੇ ਆਵਹਿ ਭਾਗ ॥
sanjog vijog du-ay kaar chalaaveh laykhay aavahi bhaag.
Union with Him, and separation from Him, come by His Will. We come to receive what is written in our destiny.
سنّجوگُۄِجوگُدُءِکارچلاۄہِلیکھےآۄہِبھاگ
سنجوگ ۔ ملاپ وجوگ۔ جدائی ۔کار چلاو بہہ۔ دنیاوی کام چلتا ہے۔ اورا ۔علاوہ۔بھاگ ۔ حصہ ۔ساد ۔ لذت ۔ لطف ۔ مزہ۔لیکھے ۔ تحریر اعمالنامہ ۔
وصل اور ہجر ۔ میل اور جدائی دونوں سے دنیا کے کام چلتے ہیں ۔ملتا ہے حصہ وہی جو تحریر ہے اعمالنامے میں ۔