Urdu-Raw-Page-4

ਅਸੰਖ ਭਗਤ ਗੁਣ ਗਿਆਨ ਵੀਚਾਰ ॥
asaNkh bhagat gun gi-aan veechaar.
Countless devotees contemplate the virtues and wisdom of the Almighty.
اسنّکھبھگتگُنھگِیانۄیِچار॥
، تیاگی ۔ تارک ۔ گن وبچار۔ الہّٰی اوصاف کی سوچ
بیشمار الہّٰی عاشِق اوَصّاف الہّٰی کی وِچار میں کرتے ہیں ۔

ਅਸੰਖ ਸਤੀ ਅਸੰਖ ਦਾਤਾਰ ॥
asaNkh satee asaNkh daataar.
There are countless holy persons and countless the philanthropists.
اسنّکھستیِاسنّکھداتار॥
۔ ستی ۔حقیقت پسند ۔
۔ بیشمار ہیں سچ والے اُور سخاوَت کرتے ہیں

ਅਸੰਖ ਸੂਰ ਮੁਹ ਭਖ ਸਾਰ ॥
asaNkh soor muh bhakh saar.
There are countless spiritual heroic warriors, who bear the brunt of attack in the battlefield of life.
اسنّکھسوُرمُہبھکھسار॥
سور ۔ بہادر ۔ بھکہہ سار ہتھیار وں کے وار بَر داشت کرنے والے
لاتعداد روحانی بہادر جنگجو ہیں ، جوزندگی کے میدان جنگ میں حملے کا نشانہ بنتے ہیں۔

ਅਸੰਖ ਮੋਨਿ ਲਿਵ ਲਾਇ ਤਾਰ ॥
asaNkh mon liv laa-ay taar.
There are countless silent devotees who are attuned to the Almighty in single-minded devotion.
اسنّکھمونِلِۄلاءِتار॥
۔ توتار ، لگاتاردھیان لگانا
بیشمار ہیں جنگجو بہادر بیشمار خاموشی سے دھیان خدا میں لاتے ہیں

ਕੁਦਰਤਿ ਕਵਣ ਕਹਾ ਵੀਚਾਰੁ ॥
kudrat kavan kahaa veechaar.
As powerless as I am, how can I describe Your immense creation.
کُدرتِکۄنھکہاۄیِچارُ॥
۔ قدرت۔ طاقت
جتنا میں بے اختیار ہوں ، آپ کی بے پناہ تخلیقات کو کیسے بیان کرسکتا ہوں؟

ਵਾਰਿਆ ਨ ਜਾਵਾ ਏਕ ਵਾਰ ॥
vaari-aa na jaavaa ayk vaar.
I have nothing to offer that befits Your Greatness. Offering even my life will not suffice.
ۄارِیانجاۄاایکۄار॥
۔ واریا ، قربان ہونا ۔
مجھ کبَ ہے طاقت جان فِدا کردوں

ਜੋ ਤੁਧੁ ਭਾਵੈ ਸਾਈ ਭਲੀ ਕਾਰ ॥
jo tuDh bhaavai saa-ee bhalee kaar.
Whatever pleases You, is best for all.
جوتُدھُبھاۄےَسائیِبھلیِکار॥
کام وَہی اَچھّا ہے جس سے سمجھے نیک تو ہی

ਤੂ ਸਦਾ ਸਲਾਮਤਿ ਨਿਰੰਕਾਰ ॥੧੭॥
too sadaa salaamat nirankaar. ||17||
You alone are the Eternal and the Formless one. ||17||
توُسداسلامتِنِرنّکار
اے خُدا تو ہمیشہ دائم قائم تُو ہی ۔

Stanza 18
As in the previous stanza, every line in this stanza also starts with the word ‘Asankh’ which means countless or infinite. Guru Nanak is expressing astonishment at the various forms of evils prevalent in the world. In the end, he states that God alone is eternal and formless one and whatever pleases Him is best for all.
پچھلے پیرا گراف کی طرحاس پیراگرافکی ہر سطر کا آغاز بھی لفظ ـــ‘‘اسانکھ’’ سے ہوتا ہے جس کے معنی ہیں ان گنت یا لامحدود۔ گرو نانک دنیا میں مروجہ برائیوں کی مختلف شکلوں پر حیرت کا اظہار کررہے ہیں۔ آخر میں ، وہ بیان کرتا ہے کہ صرف خدا ہی ابدی اور بے بنیاد ہے اور جو بھی اسکو پسند ہے وہی سب کے لئے بہترین ہے۔

ਅਸੰਖ ਮੂਰਖ ਅੰਧ ਘੋਰ ॥
asaNkh moorakh anDh ghor.
Countless are fools, blinded by ignorance.
اسنّکھموُرکھانّدھگھور॥
مورکھ ۔ اندگہور ، نہایت جاہل۔
بیشمار ہیںجاہل اِس دُنیا میں

ਅਸੰਖ ਚੋਰ ਹਰਾਮਖੋਰ ॥
asaNkh chor haraamkhor.
Countless are thieves and embezzlers.
اسنّکھچورہرامکھور॥
حرام خور بلاکمائے کھانے والا ۔
بیشمار چوری کرنیواے بلا کمائے کھاتے ہیں

ਅਸੰਖ ਅਮਰ ਕਰਿ ਜਾਹਿ ਜੋਰ ॥
asaNkh amar kar jaahi jor.
Countless impose their will by force.
اسنّکھامرکرِجاہِجور
اَمر ۔حُکم ۔ زور۔ زبردستی
بیشمار اِس عالم میں جابر زور اور طاقت سے اَپنا حُکم چلاتے ہیں

ਅਸੰਖ ਗਲਵਢ ਹਤਿਆ ਕਮਾਹਿ ॥
asaNkh galvadh hati-aa kamaahi.
Countless are cut-throats and ruthless killers.
اسنّکھگلۄڈھہتِیاکماہِ
۔بیشمار قاتل ہیں۔ اس عالم میں جو قتل کا ظُلم کرتے ہیں

ਅਸੰਖ ਪਾਪੀ ਪਾਪੁ ਕਰਿ ਜਾਹਿ ॥
asaNkh paapee paap kar jaahi.
Countless are sinners who keep on sinning.
اسنّکھپاپیِپاپُکرِجاہِ
۔ بیشمار اِس دُنیا میں ہیں گُناہگار جو گُناہ کرکے اِس عالم سے گناہوں میں مر جاتے ہیں

ਅਸੰਖ ਕੂੜਿਆਰ ਕੂੜੇ ਫਿਰਾਹਿ ॥
asaNkh koorhi-aar koorhay firaahi.
Countless are liars, wandering lost in their lies.
اسنّکھکوُڑِیارکوُڑےپھِراہِ
بے شمار جھوٹے ہیں جو اپنے جھوٹ میں گم رہتے ہیں

ਅਸੰਖ ਮਲੇਛ ਮਲੁ ਭਖਿ ਖਾਹਿ ॥
asaNkh malaychh mal bhakh khaahi.
Countless are wicked who thrive on immoral behavior.
اسنّکھملیچھملُبھکھِکھاہِ
بے شمار بدکار ہیں جو غیر اخلاقی سلوک کو فروغ دیتے ہیں

ਅਸੰਖ ਨਿੰਦਕ ਸਿਰਿ ਕਰਹਿ ਭਾਰੁ ॥
asaNkh nindak sir karahi bhaar.
Countless are slanderers who continue committing sins by speaking ill of others.
اسنّکھنِنّدکسِرِکرہِبھارُ
سر ۔ ذمے
بیشمار ہی غیبت کرتے ہیں اَور غیب کا گُناہ ذمے لے لیتے ہیں

ਨਾਨਕੁ ਨੀਚੁ ਕਹੈ ਵੀਚਾਰੁ ॥
naanak neech kahai veechaar.
Nanak describes the state of the lowly (in the stanzas aforesaid).
نانکُنیِچُکہےَۄیِچارُ
کمینہ غریب نانک یہ سوچ بناتا ہے

ਵਾਰਿਆ ਨ ਜਾਵਾ ਏਕ ਵਾਰ ॥
vaari-aa na jaavaa ayk vaar.
I have nothing to offer that befits Your Greatness, not even my life.
ۄارِیانجاۄاایکۄار
مجھ میں کہاں ہے طاقت صدقہ ہوں ایکبار بھی تجھ پر

ਜੋ ਤੁਧੁ ਭਾਵੈ ਸਾਈ ਭਲੀ ਕਾਰ ॥
jo tuDh bhaavai saa-ee bhalee kaar.
Whatever pleases You, is good for all.
جوتُدھُبھاۄےَسائیِبھلیِکار
۔ کام وہی اَچھا ہے جس سے اَچھّا سمجھے تو ہی

ਤੂ ਸਦਾ ਸਲਾਮਤਿ ਨਿਰੰਕਾਰ ॥੧੮॥
too sadaa salaamat nirankaar. ||18||
You alone are Eternal and Formless one. ||18||
توُسداسلامتِنِرنّکار
۔ تو سدا سلامت پاک بے وجود تو ہی ۔ بےآکار تو ہی

Stanza 19
As in the previous Stanza, each line here as well starts with the word ‘Asankh’, which means countless or infinite. In this stanza, Guru Nanak says in amazement that God’s creation is so vast that no words have the ability to describe its greatness
سابقہ پیراگراف کی طرح اس پیراگراف میں بھی ہر سطر کا آغاز لفظ ‘‘اسانکھ’’ کے ساتھ ہی ہوتا ہے ، جس کا مطلب ہے ان گنت یا لامحدود۔ اس پیرے میں ، گرو نانک حیرت سے کہتے ہیں کہ خدا کی تخلیق اس قدر وسیععریض ہے کہ کائنات میں کوئی بھی لفظ اس کی عظمت بیان کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتا۔

ਅਸੰਖ ਨਾਵ ਅਸੰਖ ਥਾਵ ॥
asaNkh naav asaNkh thaav.
Countless are the names of your creations and countless of their places.
اسنّکھناۄاسنّکھتھاۄ
ناو۔ نام ۔ تھاو۔ مقام ۔ جگہ
اس طرح کوئی ہی نام ہیں اس طرح نہیں مقام بھی جن تک انسانی رسائی نا ممکن ہے

ਅਗੰਮ ਅਗੰਮ ਅਸੰਖ ਲੋਅ ॥
agamm agamm asaNkh lo-a.
There are countless worlds that are inaccessible and unapproachable.
اگنّماگنّماسنّکھلوء
بیشمار دنیائیگی اور بھی ہیں

ਅਸੰਖ ਕਹਹਿ ਸਿਰਿ ਭਾਰੁ ਹੋਇ ॥
asaNkh kehahi sir bhaar ho-ay.
Even the word countless cannot represent the infinite nature of His creation.
اسنّکھکہہِسِرِبھارُہوءِ
۔ ذمہ ۔ بھار ، دوش ، الزام
بیشمار کہنا بھی گُناہ ہے اپنے لئے

ਅਖਰੀ ਨਾਮੁ ਅਖਰੀ ਸਾਲਾਹ ॥
akhree naam akhree saalaah.
It is by the use of the words that His name can be recited; it is by the use of the words that His praises can be sung.
اکھریِنامُاکھریِسالاہ
۔ اکھری ، حرفوں سے ۔ صلاح ۔ تعریف ، صفت ۔
لفظوں اَور حرفوں سے نام بَنتا ہے

ਅਖਰੀ ਗਿਆਨੁ ਗੀਤ ਗੁਣ ਗਾਹ ॥
akhree gi-aan geet gun gaah.
It is through the medium of words that Divine Knowledge can be acquired, His praises sung and the virtues known.
اکھریِگِیانُگیِتگُنھگاہ
گیان ۔ علم ۔گن ۔وصف
حرفوں سے حمدّ بھی ہوئی ہے

ਅਖਰੀ ਲਿਖਣੁ ਬੋਲਣੁ ਬਾਣਿ ॥
akhree likhan bolan baan.
The written and spoken language can only be expressed using words.
اکھریِلِکھنھُبولنھُبانھِ
۔ بان ۔ کلام ۔ بولن ، گفتار۔
حرفوں ہی میں عِلم لکھتا ہے حرفوں ہی سے گیت وَصفّ کے گاتے ہیں حرفوںہی سے بولی بکی جاتی ہے

ਅਖਰਾ ਸਿਰਿ ਸੰਜੋਗੁ ਵਖਾਣਿ ॥
akhraa sir sanjog vakhaan.
Only through words one’s destiny can be explained.
اکھراسِرِسنّجوگُۄکھانھِ
سر سنجوگ۔ تقدیر جو پیشانی پربکی ہے۔۔
حرفوں سے ہی سے تقدیر بھی درج ہے پیشانی

ਜਿਨਿ ਏਹਿ ਲਿਖੇ ਤਿਸੁ ਸਿਰਿ ਨਾਹਿ ॥
jin ayhi likhay tis sir naahi.
He, who has written everybody’s destiny, is beyond destiny for Himself.
جِنِایہِلِکھےتِسُسِرِناہِ
حرفوں ہی سے مضمون بھی لکھے جاتے ہیں

ਜਿਵ ਫੁਰਮਾਏ ਤਿਵ ਤਿਵ ਪਾਹਿ ॥
jiv furmaa-ay tiv tiv paahi.
As He ordains, so do we receive.
جِۄپھُرماۓتِۄتِۄپاہِ
مگر کہنے والے کے نہیں لکھا ہے جیسا ہے حُکم الہّٰی ۔ ویسا ویسا پاتا ہے ۔

ਜੇਤਾ ਕੀਤਾ ਤੇਤਾ ਨਾਉ ॥
jaytaa keetaa taytaa naa-o.
The universe is the manifestation of Your Name.
جیتاکیِتاتیتاناءُ
نہیں ہے طاقت مجھ میں کوئی سمجھ سکوں تجھ کو میں

ਵਿਣੁ ਨਾਵੈ ਨਾਹੀ ਕੋ ਥਾਉ ॥
vin naavai naahee ko thaa-o.
There is no place where He is not.
ۄِنھُناۄےَناہیِکوتھاءُ
ایسی کوئی جگہ نہیں جہاں پر تو موجود نہیں ہے

ਕੁਦਰਤਿ ਕਵਣ ਕਹਾ ਵੀਚਾਰੁ ॥
kudrat kavan kahaa veechaar.
How can I describe Your Creative Power?
کُدرتِکۄنھکہاۄیِچارُ
قدرت ۔ طاقت ۔ ویچار ۔ سمجھ کر
تیری تخلیقی صلاحیتوں کو میں کیسے بیان کر سکتا ہوں

ਵਾਰਿਆ ਨ ਜਾਵਾ ਏਕ ਵਾਰ ॥
vaari-aa na jaavaa ayk vaar.
I cannot even once be a sacrifice to You.
ۄارِیانجاۄاایکۄار
۔ جان کروں قربان تجہی پر ایکبار

ਜੋ ਤੁਧੁ ਭਾਵੈ ਸਾਈ ਭਲੀ ਕਾਰ ॥
jo tuDh bhaavai saa-ee bhalee kaar.
Whatever pleases You, is what is truly good.
جوتُدھُبھاۄےَسائیِبھلیِکار
کاراچھی ہے کار وہی جس کو تو سمجھے اچھی کار

ਤੂ ਸਦਾ ਸਲਾਮਤਿ ਨਿਰੰਕਾਰ ॥੧੯॥
too sadaa salaamat nirankaar. ||19||
You are the Eternal and Formless one. ||19||
توُسداسلامتِنِرنّکار
تو ہی تیری ذات سدا سلامت اور ہے پاک تو ہی

Stanza 20
In this stanza, Guru Nanak emphasizes the importance of spiritual ‘cleansing’ of mind. Evil thoughts and bad deeds are harmful to our minds. This pollution canbe removed from the mind by meditating on God with loving devotion. In this hymn, Guru Nanak says that a person becomes pure, not by ritualistic processes but by immersing in God’s Name with love and devotion.
اس پیرا گراف میں گرو نانک دماغ کی روحانی ‘صفائی’ کی اہمیت پر زور دیتے ہیں۔ برے خیالات اور برے اعمال ہمارے دماغوں کے لئے نقصان دہ ہیں۔ عقیدت اور محبتکے ساتھ خدا کے ساتھ غور و فکر کرکے دماغ سے اس غلاظت کو دور کیا جاسکتا ہے۔ اس تسبیح میں ، گرو نانک کہتے ہیں کہ کوئی شخص رسمی عمل سے نہیں بلکہ خدا کے نام میں پیار اور عقیدت کے ساتھ ڈوب کر ہی پاک ہو سکتا ہے۔

ਭਰੀਐ ਹਥੁ ਪੈਰੁ ਤਨੁ ਦੇਹ ॥
bharee-ai hath pair tan dayh.
When the hands, feet and the body get dirty,
بھریِئےَہتھُپیَرُتنُدیہ॥
بھریئے ۔ اگر گرو آلودہ ہو جائیں، ۔
اگر ہاتھ پاؤں یا تن بدن گرد آلودہ ہو جائے

ਪਾਣੀ ਧੋਤੈ ਉਤਰਸੁ ਖੇਹ ॥
paanee Dhotai utras khayh.
water can wash away the dirt.
پانھیِدھوتےَاُترسُکھیہ
کھیہ ۔ خاک ۔مٹی ۔
توپانی سے وھونے سے میل دور ہو جاتی ہے

ਮੂਤ ਪਲੀਤੀ ਕਪੜੁ ਹੋਇ ॥
moot paleetee kaparh ho-ay.
When clothes are soiled and stained by urine etc.,
موُتپلیِتیِکپڑُہوءِ
موت۔ پیشاب ۔پلیتی ۔ ناپاک گند ہ ۔
پیشاب سے ہو جائے نا پاک اگر

ਦੇ ਸਾਬੂਣੁ ਲਈਐ ਓਹੁ ਧੋਇ ॥
day saaboon la-ee-ai oh Dho-ay.
soap can wash them clean.
دےسابوُنھُلئیِئےَاوہُدھوءِ
صابن سے دھونے سے پلیدی دور ہو جاتی ہے

ਭਰੀਐ ਮਤਿ ਪਾਪਾ ਕੈ ਸੰਗਿ ॥
bharee-ai mat paapaa kai sang.
But when the mind is polluted by evil thoughts and sins,
بھریِئےَمتِپاپاکےَسنّگِ
مت۔ سمجھ۔پاپ ۔ گناہ۔
جَب مَن میلا ہو جائے گُناہوں سے ۔

ਓਹੁ ਧੋਪੈ ਨਾਵੈ ਕੈ ਰੰਗਿ ॥
oh Dhopai naavai kai rang.
it can be cleansed by only the recitation and love of Naam.
اوہُدھوپےَناۄےَکےَرنّگِ
ناوے الہّٰی نام
وُہ یاد نام الہّٰی سے دُھلّ جاتا ہے

ਪੁੰਨੀ ਪਾਪੀ ਆਖਣੁ ਨਾਹਿ ॥
punnee paapee aakhan naahi.
‘Virtuous’ or ‘sinner’ are not just names;
پُنّنیِپاپیِآکھنھُناہِ
پُنی ۔ ثَواب ۔ پاپی ۔ گناہگاری
ثَواب و گناہ صرف نام یا کہاوت ہی نہیں

ਕਰਿ ਕਰਿ ਕਰਣਾ ਲਿਖਿ ਲੈ ਜਾਹੁ ॥
kar kar karnaa likh lai jaahu.
we become virtuous or sinner by the kind of deeds we commit and we carry those deeds over to the next life.
کرِکرِکرنھالِکھِلےَجاہُ॥
۔ نیک و بد کار جو کوئی کرتا ہے سب اعمالنامے میں درج ہوکر ساتھ ہی اُسکے جاتے ہیں

ਆਪੇ ਬੀਜਿ ਆਪੇ ਹੀ ਖਾਹੁ ॥
aapay beej aapay hee khaahu.
You shall harvest what you plant.
آپےبیِجِآپےہیِکھاہُ॥
جو بوتا ہے سو کھاتا ہے ۔جو بوتا ہے وہی کاٹتا ہے

ਨਾਨਕ ਹੁਕਮੀ ਆਵਹੁ ਜਾਹੁ ॥੨੦॥
naanak hukmee aavhu jaahu. ||20||
(Rewards and punishments are the fruits of our deeds). O’ Nanak, as per His divine laws, you come and depart from this world based on your deeds. ||20||
نانکہُکمیِآۄہُجاہُ
اے نانک حُکم سے آتا ہےانسان حُکم سے ہی چلا جاتا ہے

Stanza 21
In this stanza, Guru Nanak says that a person becomes pure, not by ritualistic bathing etc. in a holy place, but by immersing in God’s Name with love and devotion. No matter how much knowledge a person may gain, it is not possible to fathom His greatness or know the secrets of His Creation. No matter how knowledgeable a person becomes, it is impossible to know things like when and how He created the Universe.
گرو نانک اس پیراگراف میںکہتے ہیں کہ کوئی بھی شخص کسی پاک جگہ پر رسمی غسل وغیرہ سے نہیں ، بلکہ خدا کے نام میں پیار اور عقیدت سے ڈوب کر پاک ہو تا ہے۔ کوئی شخص چاہے جتنا بھی علم حاصل کرلے ، اس کی عظمت کو سمجھنا یا اس کی تخلیق کے رازوں کو جاننا ممکن نہیں ہے۔ انسان چاہے جتنا عالم بن جائے، یہ جاننا نا ممکن ہے کہ یہ کائنات کب اور کیسے بنائی گئی۔

ਤੀਰਥੁ ਤਪੁ ਦਇਆ ਦਤੁ ਦਾਨੁ ॥
tirath tap da-i-aa dat daan.
Pilgrimages, austere discipline, compassion and charity
تیِرتھُتپُدئِیادتُدانُ॥
تیرتھ ۔ زیارت گاہ ۔ دیا ۔ رحم۔ تپ زہر ۔ پرہیز گاری ۔
کرے زیارت زہد کمائے رحم کرے ثواب کرے

ਜੇ ਕੋ ਪਾਵੈ ਤਿਲ ਕਾ ਮਾਨੁ ॥
jay ko paavai til kaa maan.
by themselves, bring only an iota of inner bliss.
جےکوپاۄےَتِلکامانُ
مان ۔ غرُور ۔ تکبر ۔
آگر اُس پر غرور گمان کرے تل جتنا پھل پائے گا۔

ਸੁਣਿਆ ਮੰਨਿਆ ਮਨਿ ਕੀਤਾ ਭਾਉ ॥
suni-aa mani-aa man keetaa bhaa-o.
A person who listens to Naam with complete devotion with love in heart
سُنھِیامنّنِیامنِکیِتابھاءُ॥
سنھیا۔ کی سماعت نام الہّٰی ۔منیا ۔ یقین کیا واثق اُس پر ۔ ایمان لائے ۔منکیتا بھاؤ ۔ دل سے اُسے پریم کیا ۔
کی سماعت ایمان لائے دل سے اُسے پیار کیا

ਅੰਤਰਗਤਿ ਤੀਰਥਿ ਮਲਿ ਨਾਉ ॥
antargat tirath mal naa-o.
is doing the real pilgrimage by thoroughly cleansing his inner self. (by immersing in Naam)
انّترگتِتیِرتھِملِناءُ
انترگتاندرونی حالت ۔
دل میں ہے زیارت گاہ تمہارے دل کو دھو لو پاک بنا لو سچا تیرتھ ہے یہی

ਸਭਿ ਗੁਣ ਤੇਰੇ ਮੈ ਨਾਹੀ ਕੋਇ ॥
sabh gun tayray mai naahee ko-ay.
O God, You are the Possessor of all attributes. I do not have the name of all of them۔
سبھِگُنھتیرےمےَناہیِکوءِ॥
اے خدا تو سب وصفوں کا مالک مجھ میں وصف کا نام ہیں

ਵਿਣੁ ਗੁਣ ਕੀਤੇ ਭਗਤਿ ਨ ਹੋਇ ॥
vin gun keetay bhagat na ho-ay.
All virtue is in praising You, O’ Almighty! Without virtue, there can be no devotional worship.
ۄِنھُگُنھکیِتےبھگتِنہوءِ
بن گن کیتے ۔ بلا اَوصّاف۔بھگت پریمی ، محبو ب الہّٰی
جب تجھ میں وصف نہیں ہیں تو بھگتی کا تجھ میں نام نہیں

ਸੁਅਸਤਿ ਆਥਿ ਬਾਣੀ ਬਰਮਾਉ ॥
su-asat aath banee barmaa-o.
I bow to You, the creator of Maya and the creator of the Divine Word.
سُئستِآتھِبانھیِبرماءُ॥
سو آستتو کامیا ہوئے۔برماؤ ۔برہما ۔
دولت اور کلام کا مالک اندیش خدا ہے

ਸਤਿ ਸੁਹਾਣੁ ਸਦਾ ਮਨਿ ਚਾਉ ॥
sat suhaan sadaa man chaa-o.
You are eternal, beautiful and always everlasting inner joy.
ستِسُہانھُسدامنِچاءُ
ست ۔ سچا ۔سہاناچھا لگتا ہے ۔من چاؤ ۔ دل میں خوشی ۔
جس سے روحانی سکون وخوشیو خرم سدا ہے

ਕਵਣੁ ਸੁ ਵੇਲਾ ਵਖਤੁ ਕਵਣੁ ਕਵਣ ਥਿਤਿ ਕਵਣੁ ਵਾਰੁ ॥
kavan so vaylaa vakhat kavan kavan thit kavan vaar.
What was that time, and what was that moment? What was that day, and what was that date?
کۄنھُسُۄیلاۄکھتُکۄنھُکۄنھتھِتِکۄنھُۄارُ
ویلا ۔ وقت ۔ تھت۔ چندرماں ۔ یا چاند کا دن
وہ کوئی وقت تھا،وہ چاند کی کونسی تاریخ تھی

ਕਵਣਿ ਸਿ ਰੁਤੀ ਮਾਹੁ ਕਵਣੁ ਜਿਤੁ ਹੋਆ ਆਕਾਰੁ ॥
kavan se rutee maahu kavan jit ho-aa aakaar.
What was that season, and what was that month, when the Universe was created?
کۄنھِسِرُتیِماہُکۄنھُجِتُہویاآکارُ
۔ماہ مہینہ ۔رتی۔ موسم ۔جتجب ۔آکار ۔ عالم ظہور ۔ پذیر ہوا
۔ کونسا دن کونسا موسم جب یہ عالم ظہور میں آیا

ਵੇਲ ਨ ਪਾਈਆ ਪੰਡਤੀ ਜਿ ਹੋਵੈ ਲੇਖੁ ਪੁਰਾਣੁ ॥
vayl na paa-ee-aa pandtee je hovai laykh puraan.
The Pandits (the Hindu scholars) did not know the time when the universe was created, otherwise they would have recorded it in the Puranas (Hindu Scriptures).
ۄیلنپائیِیاپنّڈتیِجِہوۄےَلیکھُپُرانھُ॥
ویل۔ وقت ۔
وقت کا گر ہوتا پتہ پنڈتوں کو تو پران میں وہ لکھ دیتے

ਵਖਤੁ ਨ ਪਾਇਓ ਕਾਦੀਆ ਜਿ ਲਿਖਨਿ ਲੇਖੁ ਕੁਰਾਣੁ ॥
vakhat na paa-i-o kaadee-aa je likhan laykh kuraan.
The Qadis (the Muslim scholars) did not know it either, otherwise
they would have recorded it in the Quran.
ۄکھتُنپائِئوکادیِیاجِلِکھنِلیکھُکُرانھُ
وکھت ۔ ودت۔قادیا ۔ قاضی۔
قاضی کو ہوتا معلوم اگر لکھ دیتے صاف قران میں وہ

ਥਿਤਿ ਵਾਰੁ ਨਾ ਜੋਗੀ ਜਾਣੈ ਰੁਤਿ ਮਾਹੁ ਨਾ ਕੋਈ ॥
thit vaar naa jogee jaanai rut maahu naa ko-ee.
The day, the date, the month or the season when the Universe was created were not known to the Yogis either.
تھِتِۄارُناجوگیِجانھےَرُتِماہُناکوئیِ
تھت ۔ چاند کا دن ۔وار ۔ دن کا نام ۔رُت موسم ۔ماہ ۔ مہینہ ۔
جوگی بھی نہیں جانتا (جب کب) یہ دنیا ظہور میں آئی ہے کونسا دن ، مہینہ اور موسم تھا

ਜਾ ਕਰਤਾ ਸਿਰਠੀ ਕਉ ਸਾਜੇ ਆਪੇ ਜਾਣੈ ਸੋਈ ॥
jaa kartaa sirthee ka-o saajay aapay jaanai so-ee.
The Creator alone knows when He created the universe.
جاکرتاسِرٹھیِکءُساجےآپےجانھےَسوئیِ
کرتا ۔ پیدا کرنے والا ۔سرٹھی۔ عالم ۔ ساجے ۔ بنانے والا ۔سوئی ۔ وہی ۔
۔ ماسوائے کار ساز کرتا ر کے جس نے یہعالم پیدا کیا ہے ۔وہ خود وہی جانتا ہے ۔

ਕਿਵ ਕਰਿ ਆਖਾ ਕਿਵ ਸਾਲਾਹੀ ਕਿਉ ਵਰਨੀ ਕਿਵ ਜਾਣਾ ॥
kiv kar aakhaa kiv saalaahee ki-o varnee kiv jaanaa.
How can I speak of His Greatness? How can I praise Him? How can
I describe His virtues? How can I know Him?
کِۄکرِآکھاکِۄسالاہیِکِءُۄرنیِکِۄجانھا
کوکر۔ کس طرح ۔ صالاحی ۔ تعریف۔ورتی ۔ بیان کرتا
کے لئے بولوں تعریف کروں۔ بیان کروں اورسمجھوں