Urdu-Raw-Page-39

ਤਿਨ ਕੀ ਸੇਵਾ ਧਰਮ ਰਾਇ ਕਰੈ ਧੰਨੁ ਸਵਾਰਣਹਾਰੁ ॥੨॥
tin kee sayvaa Dharam raa-ay karai Dhan savaaranhaar. ||2||
Great is the Almighty who blesses those spiritual beings and they are honored by the Almighty Himself.
تِنکیِسیۄادھرمراءِکرےَدھنّنُسۄارنھہارُ
۔ دھرم رائے ۔ الہٰی منصف
اس قابل ستائش خدا پر ایسے وحدت کے پرستاروں کی دھرم رائے بھی خدمت کرتا ہے

ਮਨ ਕੇ ਬਿਕਾਰ ਮਨਹਿ ਤਜੈ ਮਨਿ ਚੂਕੈ ਮੋਹੁ ਅਭਿਮਾਨੁ ॥
man kay bikaar maneh tajai man chookai moh abhimaan.
One who eliminates mental wickedness from within the mind, and casts out emotional attachment and egotistical pride,
منکےبِکارمنہِتجےَمنِچوُکےَموہُابھِمانُ
۔ من کے وکار منہیان چھوڑے
چوکے موہ ابھیمان ۔غرور و تکبر دورکرئے
جو انسان دل سے تکبر اور دولتی محبت دور ہو جاتی ہے

ਆਤਮ ਰਾਮੁ ਪਛਾਣਿਆ ਸਹਜੇ ਨਾਮਿ ਸਮਾਨੁ ॥
aatam raam pachhaani-aa sehjay naam samaan.
comes to recognize the All-pervading Soul, and is intuitively absorbed into the Naam.
آتمرامُپچھانھِیاسہجےنامِسمانُ
ان کی سب میں بسنے والے خدا کی پہچان ہو جاتی ہے ۔ وہ روحانی سکون میں الہٰی نام سے الفت پا لیتے ہیں

ਬਿਨੁ ਸਤਿਗੁਰ ਮੁਕਤਿ ਨ ਪਾਈਐ ਮਨਮੁਖਿ ਫਿਰੈ ਦਿਵਾਨੁ ॥
bin satgur mukat na paa-ee-ai manmukh firai divaan.
Without the Guru’s guidance one cannot get rid of evil tendencies; the self-willed continue wandering like lunatics
بِنُستِگُرمُکتِنپائیِئےَمنمُکھِپھِرےَدِۄانُ.
دیوان ۔دیوانہ ۔پاگل
خودی پسند بھٹکتا رہتا ہے بغیر مرشد نجات نہیں ملتی

ਸਬਦੁ ਨ ਚੀਨੈ ਕਥਨੀ ਬਦਨੀ ਕਰੇ ਬਿਖਿਆ ਮਾਹਿ ਸਮਾਨੁ ॥੩॥
sabad na cheenai kathnee badnee karay bikhi-aa maahi samiaan. ||3||
They do not reflect on the Guru’s word. Instead, they utter only empty words while engrossed in the poison of Maya.
سبدُنچیِنےَکتھنیِبدنیِکرےبِکھِیاماہِسمانُ
شبد نہ چینے ۔کلام نہ سمجھے
کلام نہیں سمجھتا باتیں بناتا ہے ۔ بدیوں میں ملوث ہے ۔

ਸਭੁ ਕਿਛੁ ਆਪੇ ਆਪਿ ਹੈ ਦੂਜਾ ਅਵਰੁ ਨ ਕੋਇ ॥
sabh kichh aapay aap hai doojaa avar na ko-ay.
God is all in all, and there is no other like Him.
سبھُکِچھُآپےآپِہےَدوُجااۄرُنکوءِ
خدا سب کچھ کرنے اور کرانے والا ہے اسکے علاوہ دیگر کوئی نہیں

ਜਿਉ ਬੋਲਾਏ ਤਿਉ ਬੋਲੀਐ ਜਾ ਆਪਿ ਬੁਲਾਏ ਸੋਇ ॥
ji-o bolaa-ay ti-o bolee-ai jaa aap bulaa-ay so-ay.
With his blessings I eulogize, as and when He desires.
جِءُبولاۓتِءُبولیِئےَجاآپِبُلاۓسوءِ
جیسے الہٰی فرمان ہے ویسے ہی انسان بولتا ہے

ਗੁਰਮੁਖਿ ਬਾਣੀ ਬ੍ਰਹਮੁ ਹੈ ਸਬਦਿ ਮਿਲਾਵਾ ਹੋਇ ॥
gurmukh banee barahm hai sabad milaavaa ho-ay.
The Word of the Guru is God Himself. It is through the Word, that one is united with the Almighty.
گُرمُکھِبانھیِب٘رہمُہےَسبدِمِلاۄاہوءِ
گورمکھ بانی برم ہے ۔مرشدی کلام الہٰی کلام ہے
مرشد کاکلام الہٰی کلام ہے کلام سے الہٰی ملاپ ہو تا ہے ۔

ਨਾਨਕ ਨਾਮੁ ਸਮਾਲਿ ਤੂ ਜਿਤੁ ਸੇਵਿਐ ਸੁਖੁ ਹੋਇ ॥੪॥੩੦॥੬੩॥
naanak naam samaal too jit sayvi-ai sukh ho-ay. ||4||30||63||
O’ Nanak, let Naam reside in you by remembering Him with fervor. This way, spiritual peace is obtained.
نانکنامُسمالِتوُجِتُسیۄِئےَسُکھُہوءِ
نام سمال۔نام یاد کر
اے نانک نام دلمیں بسا جس کی خدمت سے سکھ ملتا ہے

ਸਿਰੀਰਾਗੁ ਮਹਲਾ ੩ ॥
sireeraag mehlaa 3.
Siree Raag, through the Third Guru:

ਜਗਿ ਹਉਮੈ ਮੈਲੁ ਦੁਖੁ ਪਾਇਆ ਮਲੁ ਲਾਗੀ ਦੂਜੈ ਭਾਇ ॥
jag ha-umai mail dukh paa-i-aa mal laagee doojai bhaa-ay.
The world is polluted with the filth of egotism and is suffering because of this. This filth of ego sticks to us because of our love of worldly attachments.
جگِہئُمےَمیَلُدُکھُپائِیاملُلاگیِدوُجےَبھاءِ
جگ۔عالم۔ دنیا۔
یہ عالم خودی کی ناپاکیزگی کی وجہ سے عذاب پاتا ہ
یہ نا پاکیزگی دوئی دوئش اوردنیاوی دؤلت سے محبت کیوجہ سے ہے

ਮਲੁ ਹਉਮੈ ਧੋਤੀ ਕਿਵੈ ਨ ਉਤਰੈ ਜੇ ਸਉ ਤੀਰਥ ਨਾਇ ॥
mal ha-umai Dhotee kivai na utrai jay sa-o tirath naa-ay.
This filth of egotism cannot be washed away by taking cleansing baths at hundreds of sacred shrines.
ملُہئُمےَدھوتیِکِۄےَناُترےَجےسءُتیِرتھناءِ
خودی کی گلاطت سو زیارت گاہوں کی زیارت سے دور نہیں ہوتی

ਬਹੁ ਬਿਧਿ ਕਰਮ ਕਮਾਵਦੇ ਦੂਣੀ ਮਲੁ ਲਾਗੀ ਆਇ ॥
baho biDh karam kamaavday doonee mal laagee aa-ay.
People perform many kinds of rituals to get rid of this filth but instead, end upwith twice as much filth.
بہُبِدھِکرمکماۄدےدوُنھیِملُلاگیِآءِ
بہو بدھ ۔بہت سے طریقوں سے
لوگ کئی طرح کی مذہبی رسومات ادا کرتے ہیں مگر تاہم زیادہ غلیظ ہو جاتے ہیں

ਪੜਿਐ ਮੈਲੁ ਨ ਉਤਰੈ ਪੂਛਹੁ ਗਿਆਨੀਆ ਜਾਇ ॥੧॥
parhi-ai mail na utrai poochhahu gi-aanee-aa jaa-ay. ||1||
Even by reading (holy books), this filth is not removed. Go ahead, and ask the wise ones. ||1||
پڑِئےَمیَلُناُترےَپوُچھہُگِیانیِیاجاءِ
پڑھنےسے ذہنی غلاظت دورنہیں ہوتی خواہ عالموں سے پتہ کر لو

ਮਨ ਮੇਰੇ ਗੁਰ ਸਰਣਿ ਆਵੈ ਤਾ ਨਿਰਮਲੁ ਹੋਇ ॥
man mayray gur saran aavai taa nirmal ho-ay.
O’ my mind, coming to the Sanctuary of the Guru, you shall become immaculate and pure.
منمیرےگُرسرنھِآۄےَتانِرملُہوءِ
اے دل مرشد کی پناہ و صحبت سے پاک ہوتا ہے

ਮਨਮੁਖ ਹਰਿ ਹਰਿ ਕਰਿ ਥਕੇ ਮੈਲੁ ਨ ਸਕੀ ਧੋਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
manmukh har har kar thakay mail na sakee Dho-ay. ||1|| rahaa-o.
The self-willed have grown weary of contemplating on Naam, but their filth is not removed.
منمُکھہرِہرِکرِتھکےمیَلُنسکیِدھوءِ رہاءُ
من میلے ۔ناپاک من سے
خودی پسند ہر ۔ہر۔رام رام کہتے کہتے تھک جاتے ہیں نا پاکیزگی دور نہیں ہوتی ۔

ਮਨਿ ਮੈਲੈ ਭਗਤਿ ਨ ਹੋਵਈ ਨਾਮੁ ਨ ਪਾਇਆ ਜਾਇ ॥
man mailai bhagat na hova-ee naam na paa-i-aa jaa-ay.
With a polluted mind, devotional service cannot be performed, and Naam cannot be obtained.
منِمیَلےَبھگتِنہوۄئیِنامُنپائِیاجاءِ
ناپاک دل سے بھگتی الہٰی پریم نہیں ہوسکتا ار نام نہیں سچ۔ حق وحقیقت حاصل نہیں ہوسکتی

ਮਨਮੁਖ ਮੈਲੇ ਮੈਲੇ ਮੁਏ ਜਾਸਨਿ ਪਤਿ ਗਵਾਇ ॥
manmukh mailay mailay mu-ay jaasan pat gavaa-ay.
The self-willed filthy die in filth, and spiritually, they depart in disgrace.
منمُکھمیَلےمیَلےمُۓجاسنِپتِگۄاءِ
منھکہ ۔خود ارادی ۔ خود ی پسند ۔
خودی پسند ناپاکیزگی میں ہی ختم ہو جاتے ہیں اور عزت گنوا لیتے ہیں

ਗੁਰ ਪਰਸਾਦੀ ਮਨਿ ਵਸੈ ਮਲੁ ਹਉਮੈ ਜਾਇ ਸਮਾਇ ॥
gur parsaadee man vasai mal ha-umai jaa-ay samaa-ay.
Through the Guru’s grace, God comes to abide in one’s heart, and the filth of ego is dispelled.
گُرپرسادیِمنِۄسےَملُہئُمےَجاءِسماءِ
گرپرسادی ۔رحمت مرشد سے
رحمت مرشد سے خدا دل میں بستا ہے۔ جس سے خودی کی نا پاکیزگی دورہوتی ہے

ਜਿਉ ਅੰਧੇਰੈ ਦੀਪਕੁ ਬਾਲੀਐ ਤਿਉ ਗੁਰ ਗਿਆਨਿ ਅਗਿਆਨੁ ਤਜਾਇ ॥੨॥
ji-o anDhayrai deepak baalee-ai ti-o gur gi-aan agi-aan tajaa-ay. ||2||
Like a lamp lit in the darkness, the spiritual wisdom of the Guru dispels ignorance.
جِءُانّدھیرےَدیِپکُبالیِئےَتِءُگُرگِیانِاگِیانُتجاءِ
جیؤ اندھیرے جیسے ۔اندھیرے میں
جیسے اندھیرےچراغ جلانے سے اندھیرا کا فور ہوجاتا ہے ایسے ہی علم مرشد لاعلمی ۔ نادانی جہالت ختم کر دیتا ہے

ਹਮ ਕੀਆ ਹਮ ਕਰਹਗੇ ਹਮ ਮੂਰਖ ਗਾਵਾਰ ॥
ham kee-aa ham karhagay ham moorakh gaavaar.
“I have done this, and I will do that”. Egotistical conceited fools utter such words.
ہمکیِیاہمکرہگےہمموُرکھگاۄار
ہم کیا ۔میں نے کیا ہے
انسان ہمیشہ یہی کہتا ہے کہ یہ کام ہم نے کیا ہے ہم کرین گے یہ جہالت ہے

ਕਰਣੈ ਵਾਲਾ ਵਿਸਰਿਆ ਦੂਜੈ ਭਾਇ ਪਿਆਰੁ ॥
karnai vaalaa visri-aa doojai bhaa-ay pi-aar.
When I forget the Doer of all; I am caught in the love of duality.
کرنھےَۄالاۄِسرِیادوُجےَبھاءِپِیارُ
ڈوبے بھائے ۔دنیاوی دؤلت سے پیار
کرنے والے کو بھلا دیا وہ ہمیشہ دنیاوی دؤلت سے پیار رکھتے ہیں

ਮਾਇਆ ਜੇਵਡੁ ਦੁਖੁ ਨਹੀ ਸਭਿ ਭਵਿ ਥਕੇ ਸੰਸਾਰੁ ॥
maa-i-aa jayvad dukh nahee sabh bhav thakay sansaar.
There is no pain as great as the pain of Maya; it drives people to wander all around the world, until they become exhausted.

مائِیاجیۄڈُدُکھُنہیِسبھِبھۄِتھکےسنّسارُ
دنیا میں دؤلت جتنا اور کوئی عذاب نہیں ۔ دؤلت کی محبت میں گرفتار انسان بھٹکتا ذلیل و خوار ہوتا ہے

ਗੁਰਮਤੀ ਸੁਖੁ ਪਾਈਐ ਸਚੁ ਨਾਮੁ ਉਰ ਧਾਰਿ ॥੩॥
gurmatee sukh paa-ee-ai sach naam ur Dhaar. ||3||
Through the Guru’s Teachings, and Naam enshrined in the heart, inner peace is achieved.
گُرمتیِسُکھُپائیِئےَسچُنامُاُردھارِ
گرمتی۔ سبق مرشد
سبق مرشد پر عمل پیرا ہوکر دل میں الہٰی نام بسا کرروحانی سکون پاتا ہے

ਜਿਸ ਨੋ ਮੇਲੇ ਸੋ ਮਿਲੈ ਹਉ ਤਿਸੁ ਬਲਿਹਾਰੈ ਜਾਉ ॥
jis no maylay so milai ha-o tis balihaarai jaa-o.
I am a sacrifice to those who meet and merge with the Almighty.
جِسنومیلےسومِلےَہءُتِسُبلِہارےَجاءُ
بلہارے ۔قربانے
جیسے خدا ملاتا ہے وہی ملتا ہے میں اُس پر قربان ہوں
ਏ ਮਨ ਭਗਤੀ ਰਤਿਆ ਸਚੁ ਬਾਣੀ ਨਿਜ ਥਾਉ ॥
ay man bhagtee rati-aa sach banee nij thaa-o.
The heart, that is attuned to devotional worship through the Word, meets the Almighty within itself.
اےمنبھگتیِرتِیاسچُبانھیِنِجتھاءُ
اے دل جو انسان الہٰی عشق کے رنگ میں رنگے جاتے ہیں الہٰی نام جسکا کلام ہوجاتا ہے
ਮਨਿ ਰਤੇ ਜਿਹਵਾ ਰਤੀ ਹਰਿ ਗੁਣ ਸਚੇ ਗਾਉ ॥
man ratay jihvaa ratee har gun sachay gaa-o.
In this state, both the mind and the tongue are imbued with God’s love and sing His Praises.

منِرتےجِہۄارتیِہرِگُنھسچےگاءُ
چہوا۔ زبان
وہ ذہن روحانی سکون سے سرشار ہوکر اسی میں محو ہو جاتے ہیں ۔ ان کی زبان پر سچائی اور الہٰی نام رہتا ہے ۔
ਨਾਨਕ ਨਾਮੁ ਨ ਵੀਸਰੈ ਸਚੇ ਮਾਹਿ ਸਮਾਉ ॥੪॥੩੧॥੬੪॥
naanak naam na veesrai sachay maahi samaa-o. ||4||31||64||
O’ Nanak, this way, one never forgets Naam and always stays united with the True One.
نانکنامُنۄیِسرےَسچےماہِسماءُ
ان کادل غرضیکہ زبان سچے اور سچی صفت صلاح میں راغب ہوجاتے ہیں ۔ اے نانک انہیں نام نہیں بھولتا وہ ہمیشہ نام میں محورہتے ہیں
ਸਿਰੀਰਾਗੁ ਮਹਲਾ ੪ ਘਰੁ ੧ ॥
sireeraag mehlaa 4 ghar 1.
Siree Raag, through Fourth Guru, First House:
ਮੈ ਮਨਿ ਤਨਿ ਬਿਰਹੁ ਅਤਿ ਅਗਲਾ ਕਿਉ ਪ੍ਰੀਤਮੁ ਮਿਲੈ ਘਰਿ ਆਇ ॥
mai man tan birahu at aglaa ki-o pareetam milai ghar aa-ay.
Within my mind and body is the intense pain of separation; I worry, how can my Beloved come to meet me (in my heart)?
مےَمنِتنِبِرہُاتِاگلاکِءُپ٘ریِتمُمِلےَگھرِآءِ
میرے دل میں الہٰی جدائی کا بھاری درد ہے ۔ میرا پیارا خدا کیسے آکر میرے دل میں بسے
ਜਾ ਦੇਖਾ ਪ੍ਰਭੁ ਆਪਣਾ ਪ੍ਰਭਿ ਦੇਖਿਐ ਦੁਖੁ ਜਾਇ ॥
jaa daykhaa parabh aapnaa parabh daykhi-ai dukh jaa-ay.
When I see my God, seeing God Himself, my pain of separation goes away.
جادیکھاپ٘ربھُآپنھاپ٘ربھِدیکھِئےَدُکھُجاءِ
اگر میں الہٰی دیدار پاؤں تو دیدارسے میرا عذاب مٹے
ਜਾਇ ਪੁਛਾ ਤਿਨ ਸਜਣਾ ਪ੍ਰਭੁ ਕਿਤੁ ਬਿਧਿ ਮਿਲੈ ਮਿਲਾਇ ॥੧॥
jaa-ay puchhaa tin sajnaa parabh kit biDh milai milaa-ay. ||1||
I go and ask my friends, “How can I meet and merge with God?”||1||

جاءِپُچھاتِنسجنھاپ٘ربھُکِتُبِدھِمِلےَمِلاءِ
کت بدھ ۔کسطرح
میں اُن دوستوں سے جاکر دریافت کرؤں کہ میرا خدا سے کیسے ملاپ ہو
ਮੇਰੇ ਸਤਿਗੁਰਾ ਮੈ ਤੁਝ ਬਿਨੁ ਅਵਰੁ ਨ ਕੋਇ ॥
mayray satiguraa mai tujh bin avar na ko-ay.
O’ my Guru, without You I have no other (support) at all.
میرےستِگُرامےَتُجھبِنُاۄرُنکوءِ
اے میرے سچے مرشد میں تیرے بغیر کچھ نہیں کوئی وقت نہیں
ਹਮ ਮੂਰਖ ਮੁਗਧ ਸਰਣਾਗਤੀ ਕਰਿ ਕਿਰਪਾ ਮੇਲੇ ਹਰਿ ਸੋਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
ham moorakh mugaDh sarnaagatee kar kirpaa maylay har so-ay. ||1|| rahaa-o.
We are foolish and ignorant but have sought your sanctuary; With your grace, you are going to unite us with the Almighty. ||1||Pause||
ہمموُرکھمُگدھسرنھاگتیِکرِکِرپامیلےہرِسوءِ
۔ مگدھ ۔جاہل ۔ سرناگتی ۔شرن۔پناہ
میں نادان جاہل کو تیری پناہ ہے۔ کرم و عنائت سے مجھے خدا سے ملا دے

ਸਤਿਗੁਰੁ ਦਾਤਾ ਹਰਿ ਨਾਮ ਕਾ ਪ੍ਰਭੁ ਆਪਿ ਮਿਲਾਵੈ ਸੋਇ ॥
satgur daataa har naam kaa parabh aap milaavai so-ay.
The Guru is the Giver of Naam. It is after you have received Naam from the Guru that God unites you with Him.
ستِگُرُداتاہرِنامکاپ٘ربھُآپِمِلاۄےَسوءِ
ستگر ۔سچا مرشد
سچا مرشد الہٰی نام بخشش کونیوالا ہے ۔ اور خدا خود اس سے ملاپ کر واتا ہے
ਸਤਿਗੁਰਿ ਹਰਿ ਪ੍ਰਭੁ ਬੁਝਿਆ ਗੁਰ ਜੇਵਡੁ ਅਵਰੁ ਨ ਕੋਇ ॥
satgur har parabh bujhi-aa gur jayvad avar na ko-ay.
Spiritually, the Guru is very close to God and understands Him very well. There is no other as Great as the Guru.
ستِگُرِہرِپ٘ربھُبُجھِیاگُرجیۄڈُاۄرُنکوءِ
جیوڈ ۔اتنا بڑا
میں سچے مرشد کی پناہ آگیا ہوں ۔ وہ اپنی رحمت سے میرا الہٰی ملاپ کرائیگا

ਹਉ ਗੁਰ ਸਰਣਾਈ ਢਹਿ ਪਵਾ ਕਰਿ ਦਇਆ ਮੇਲੇ ਪ੍ਰਭੁ ਸੋਇ ॥੨॥
ha-o gur sarnaa-ee dheh pavaa kar da-i-aa maylay parabh so-ay. ||2||
I seek to enter the sanctuary of the Guru after completely surrendering myself so that with His grace, the Almighty may unite me with Him.
ہءُگُرسرنھائیِڈھہِپۄاکرِدئِیامیلےپ٘ربھُسوءِ
میں اپنے آپ کو مکمل طور پر ہتھیار ڈالنے کے بعد گرو کے حرم میں داخل ہونے کی کوشش کرتا ہوں تاکہ اپنے فضل و کرم سے اللہ تعالیٰ مجھے اپنے ساتھ جوڑ دے۔

ਮਨਹਠਿ ਕਿਨੈ ਨ ਪਾਇਆ ਕਰਿ ਉਪਾਵ ਥਕੇ ਸਭੁ ਕੋਇ ॥
manhath kinai na paa-i-aa kar upaav thakay sabh ko-ay.
No one has found Creator by doing penances, or by practicing austerities etc. All have grown tired of making such futile efforts.
منہٹھِکِنےَنپائِیاکرِاُپاۄتھکےسبھُکوءِ
من ہٹھ ۔ دلی ضد
سارے کوشش کرکے دیکھ چکے ہیں