Urdu-Raw-Page-31

ਸਿਰੀਰਾਗੁ ਮਹਲਾ ੩ ॥
sireeraag mehlaa 3.
Siree Raag, by the Third Guru:
سری راگ محلا 3

ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਛੋਡਿ ਬਿਖਿਆ ਲੋਭਾਣੇ ਸੇਵਾ ਕਰਹਿ ਵਿਡਾਣੀ ॥
amrit chhod bikhi-aa lobhaanay sayvaa karahi vidaanee.
Forsaking the spiritual life giving nectar of Naam, conceited people cling to the poison of worldly riches and power and serve others instead of God
انّم٘رِتُچھوڈِبِکھِیالوبھانھےسیۄاکرہِۄِڈانھیِ
انمرت ۔ آب حیات۔ وکھیا ۔ زہر ۔وڈائی ۔ دوسروں کی ۔ بیگانی
روحانی زندگی کو ترک کرتے ہوئے نام کی امرت عطا کرتے ہوئے ، بےشعور لوگ دنیاوی دولت اور طاقت کے زہر سے چمٹے رہتے ہیں اور خدا کی بجائے دوسروں کی خدمت کرتے ہیں۔

ਆਪਣਾ ਧਰਮੁ ਗਵਾਵਹਿ ਬੂਝਹਿ ਨਾਹੀ ਅਨਦਿਨੁ ਦੁਖਿ ਵਿਹਾਣੀ ॥
aapnaa Dharam gavaaveh boojheh naahee an-din dukh vihaanee.
In this way, they forget the purpose of human life. They do not realize (their folly) and their entire life passes in misery.
آپنھادھرمُگۄاۄہِبوُجھہِناہیِاندِنُدُکھِۄِہانھیِ
دہانی ۔ گذر ۔ رہاوقت۔ عمر ۔زندگی
اس طرح سے ، وہ انسانی زندگی کا مقصد بھول جاتے ہیں۔ انہیں (ان کی حماقت) کا ادراک نہیں ہے اور ان کی ساری زندگی مصائب میں گزر جاتی ہے۔

ਮਨਮੁਖ ਅੰਧ ਨ ਚੇਤਹੀ ਡੂਬਿ ਮੁਏ ਬਿਨੁ ਪਾਣੀ ॥੧॥
manmukh anDh na chaythee doob mu-ay bin paanee. ||1||
Thus blinded with greed, the self-conceited people do not remember God and die a spiritual death, as if they have drowned without water. ||1||
منمُکھانّدھنچیتہیِڈوُبِمُۓبِنُپانھیِ
لالچ سے اندھے ہوکر خود غرضی والے لوگ خدا کو یاد نہیں کرتے اور روحانی موت کا شکار ہوجاتے ہیں ، گویا وہ پانی میں ڈوب گئے ہیں۔

ਮਨ ਰੇ ਸਦਾ ਭਜਹੁ ਹਰਿ ਸਰਣਾਈ ॥
man ray sadaa bhajahu har sarnaa-ee.
O’ my mind, always meditate on Naam and seek God’s refuge.
منرےسدابھجہُہرِسرنھائیِ
اے میرے دماغ ، ہمیشہ نام پر غور کریں اور خدا کی پناہ مانگیں۔

ਗੁਰ ਕਾ ਸਬਦੁ ਅੰਤਰਿ ਵਸੈ ਤਾ ਹਰਿ ਵਿਸਰਿ ਨ ਜਾਈ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
gur kaa sabad antar vasai taa har visar na jaa-ee. ||1|| rahaa-o.
So that, Guru’s Word gets enshrined in your mind and as a result of that, you will never forget God.
گُرکاسبدُانّترِۄسےَتاہرِۄِسرِنجائیِ
لہذا ، گرو کا کلام آپ کے دماغ میں منسلک ہوجاتا ہے اور اس کے نتیجے میں ، آپ خدا کو کبھی نہیں بھولیں گے۔

ਇਹੁ ਸਰੀਰੁ ਮਾਇਆ ਕਾ ਪੁਤਲਾ ਵਿਚਿ ਹਉਮੈ ਦੁਸਟੀ ਪਾਈ ॥
ih sareer maa-i-aa kaa putlaa vich ha-umai dustee paa-ee.
This body is the puppet of Maya (worldly riches and power). The evil of egotism is within it.
اِہُسریِرُمائِیاکاپُتلاۄِچِہئُمےَدُسٹیِپائیِ
۔دشٹی ۔ کمینی
یہ جسم مایا کی کٹھ پتلی ہے (دنیاوی دولت اور طاقت)۔ عداوت کی برائی اس کے اندر ہے۔

ਆਵਣੁ ਜਾਣਾ ਜੰਮਣੁ ਮਰਣਾ ਮਨਮੁਖਿ ਪਤਿ ਗਵਾਈ ॥
aavan jaanaa jaman marnaa manmukh pat gavaa-ee.
(Because of the evil of egotism) these self-conceited persons get stuck in the cycle of birth and death and they lose their honor.
آۄنھُجانھاجنّمنھُمرنھامنمُکھِپتِگۄائیِ
(عداوت کی برائی کی وجہ سے) یہ خود غرضی افراد پیدائش اور موت کے چکر میں پھنس جاتے ہیں اور وہ اپنی عزت سے محروم ہوجاتے ہیں۔

ਸਤਗੁਰੁ ਸੇਵਿ ਸਦਾ ਸੁਖੁ ਪਾਇਆ ਜੋਤੀ ਜੋਤਿ ਮਿਲਾਈ ॥੨॥
satgur sayv sadaa sukh paa-i-aa jotee jot milaa-ee. ||2||
However, by following the Guru’s teaching, one obtains eternal peace and their light (soul) merges with the Supreme light.
ستگُرُسیۄِسداسُکھُپائِیاجوتیِجوتِمِلائیِ
تاہم ، گرو کی تعلیم پر عمل کرتے ہوئے ، ایک شخص کو ابدی سکون ملتا ہے اور ان کا نور (روح) اعلیٰ نور سے مل جاتا ہے۔

ਸਤਗੁਰ ਕੀ ਸੇਵਾ ਅਤਿ ਸੁਖਾਲੀ ਜੋ ਇਛੇ ਸੋ ਫਲੁ ਪਾਏ ॥
satgur kee sayvaa at sukhaalee jo ichhay so fal paa-ay.
Serving the True Guru by following his teachingsbrings a deep and profound peace, and one’s desires are fulfilled.
ستگُرکیِسیۄااتِسُکھالیِجواِچھےسوپھلُپاۓ
سچے گرو کی تعلیمات پر عمل کرکے گہرا سکون ملتا ہے ، اور خواہشات پوری ہوجاتی ہیں۔

ਜਤੁ ਸਤੁ ਤਪੁ ਪਵਿਤੁ ਸਰੀਰਾ ਹਰਿ ਹਰਿ ਮੰਨਿ ਵਸਾਏ ॥
jat sat tap pavit sareeraa har har man vasaa-ay.
Service of the Guru brings the merits of abstinence, truthfulness and self-discipline.The body is purified; and God comes to dwell within the mind.
جتُستُتپُپۄِتُسریِراہرِہرِمنّنِۄساۓ
گرو کی خدمت سے پرہیز ، سچائی اور خود نظم و ضبط کی خوبی آتی ہے۔ جسم پاک ہے۔ اور خدا دماغ میں رہتا ہے۔

ਸਦਾ ਅਨੰਦਿ ਰਹੈ ਦਿਨੁ ਰਾਤੀ ਮਿਲਿ ਪ੍ਰੀਤਮ ਸੁਖੁ ਪਾਏ ॥੩॥
sadaa anand rahai din raatee mil pareetam sukh paa-ay. ||3||
Such a person remains blissful forever, day and night. Meeting the Beloved, peace is found. ||3||
سدااننّدِرہےَدِنُراتیِمِلِپ٘ریِتمسُکھُپاۓ
ایسا شخص دن رات ہمیشہ ہمیشہ کے لئے خوش کن رہتا ہے۔ محبوب سے مل کر امن پاتا ہے

ਜੋ ਸਤਗੁਰ ਕੀ ਸਰਣਾਗਤੀ ਹਉ ਤਿਨ ਕੈ ਬਲਿ ਜਾਉ ॥
jo satgur kee sarnaagatee ha-o tin kai bal jaa-o.
I dedicate myself to those who seek the Sanctuary of the True Guru.
جوستگُرکیِسرنھاگتیِہءُتِنکےَبلِجاءُ
میں اپنے آپ کو ان لوگوں کے لئے وقف کرتا ہوں جو سچے گرو کی پناہ گاہ کو تلاش کرتے ہیں۔

ਦਰਿ ਸਚੈ ਸਚੀ ਵਡਿਆਈ ਸਹਜੇ ਸਚਿ ਸਮਾਉ ॥
dar sachai sachee vadi-aa-ee sehjay sach samaa-o.
In the Court of the True One, they are blessed with true greatness; they are intuitively absorbed into God
درِسچےَسچیِۄڈِیائیِسہجےسچِسماءُ
سچی عدالت کے دربار میں ، انہیں حقیقی عظمت سے نوازا جاتا ہے۔ وہ بدیہی طور پر خدا میں جذب ہیں

ਨਾਨਕ ਨਦਰੀ ਪਾਈਐ ਗੁਰਮੁਖਿ ਮੇਲਿ ਮਿਲਾਉ ॥੪॥੧੨॥੪੫॥
naanak nadree paa-ee-ai gurmukh mayl milaa-o. ||4||12||45||
But O’ Nanak, It is only by God’s grace that one is blessed with the opportunity of meeting such Guru’s followers.
نانکندریِپائیِئےَگُرمُکھِمیلِمِلاءُ
لیکن اے نانک ، صرف خدا کے فضل سے ہی ایسے گرو کے پیروکاروں سے ملاقات کا موقع ملتا ہے۔

ਸਿਰੀਰਾਗੁ ਮਹਲਾ ੩ ॥
sireeraag mehlaa 3.
Siree Raag, by the Third Guru:
سری راگ محلا 3

ਮਨਮੁਖ ਕਰਮ ਕਮਾਵਣੇ ਜਿਉ ਦੋਹਾਗਣਿ ਤਨਿ ਸੀਗਾਰੁ ॥
manmukh karam kamaavnay ji-o dohaagan tan seegaar.
The self-willed manmukh (Humans) performs religious rituals, like the unwanted (deserted) bride decorating her body.
منمُکھکرمکماۄنھےجِءُدوہاگنھِتنِسیِگارُ
دوہاگن ۔ دوخاوندوں والی ۔ طلاق شدہ
خود پسند خو د ارادی انسانوں کے اعمال طلاق شدہ عورتوں کی مانند ہیں

ਸੇਜੈ ਕੰਤੁ ਨ ਆਵਈ ਨਿਤ ਨਿਤ ਹੋਇ ਖੁਆਰੁ ॥
sayjai kant na aavee nit nit ho-ay khu-aar.
Her Husband God does not come to her heart; day after day, she grows more and more miserable.
سیجےَکنّتُنآۄئیِنِتنِتہوءِکھُیارُ
۔ خدا سے ملاپ نہیں ہوتا ذلیل وخوارہوتے ہیں

ਪਿਰ ਕਾ ਮਹਲੁ ਨ ਪਾਵਈ ਨਾ ਦੀਸੈ ਘਰੁ ਬਾਰੁ ॥੧॥
pir kaa mahal na paav-ee naa deesai ghar baar. ||1||
By performing religious rituals self-willed person cannot feel the presence of God. He can’t visualize God’s court.
پِرکامہلُنپاۄئیِنادیِسےَگھرُبارُ
مذہبی رسومات ادا کرنے سے خودی کا شکار انسان خدا کی موجودگی کو محسوس نہیں کرسکتا۔ وہ خدا کے دربار کا تصور نہیں کرسکتا۔

ਭਾਈ ਰੇ ਇਕ ਮਨਿ ਨਾਮੁ ਧਿਆਇ ॥
bhaa-ee ray ik man naam Dhi-aa-ay.
O’ brother, meditate on the Naam with one-pointed mind.
بھائیِرےاِکمنِنامُدھِیاءِ
آرامن۔ یکسو ہوکر ۔ دل و جان سے
اے بھائی بیدارمغزویکسو ہوکرخدا کی عبادتکرو

ਸੰਤਾ ਸੰਗਤਿ ਮਿਲਿ ਰਹੈ ਜਪਿ ਰਾਮ ਨਾਮੁ ਸੁਖੁ ਪਾਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
santaa sangat mil rahai jap raam naam sukh paa-ay. ||1|| rahaa-o.
Remain united with the company of the Saints; and obtain peace by meditating on God’s Name . ||1||Pause||
سنّتاسنّگتِمِلِرہےَجپِرامنامُسُکھُپاءِ
پاکدامن خدا رسیدہ عابداں کی صحبت میں الہٰی نام کی ریاض سے سکھ ملتا ہے
اولیاء کی صحبت میں متحد رہیں۔ اور خدا کے نام پر غور کرتے ہوئے سکون حاصل کریں

ਗੁਰਮੁਖਿ ਸਦਾ ਸੋਹਾਗਣੀ ਪਿਰੁ ਰਾਖਿਆ ਉਰ ਧਾਰਿ ॥
gurmukh sadaa sohaaganee pir raakhi-aa ur Dhaar.
The Guru’s followers are like the eternally wedded brides who always keep their spouses (God) enshrined in their heart.
گُرمُکھِسداسوہاگنھیِپِرُراکھِیااُردھارِ
۔ رکھتا اردھار ۔ دلی ارادے دل میں بستا کر سے
گرو کے پیروکار ہمیشہ کی شادی شدہ دلہنوں کی طرح ہیں جو اپنے شریک حیات (خدا) کو ہمیشہ اپنے دل میں جکڑے رکھتے ہیں

ਮਿਠਾ ਬੋਲਹਿ ਨਿਵਿ ਚਲਹਿ ਸੇਜੈ ਰਵੈ ਭਤਾਰੁ ॥
mithaa boleh niv chaleh sayjai ravai bhataar.
They speak sweetly with everyone and behave very humbly. Their Master (God) enjoys their company
مِٹھابولہِنِۄِچلہِسیجےَرۄےَبھتارُ
سچے روے بھتار ۔ خدا دل میں بستا ہے
شیریں زبانعاجزی انکساری سے پیش آنےسے خدا ساتھی ہو جاتا ہے

ਸੋਭਾਵੰਤੀ ਸੋਹਾਗਣੀ ਜਿਨ ਗੁਰ ਕਾ ਹੇਤੁ ਅਪਾਰੁ ॥੨॥
sobhaavantee sohaaganee jin gur kaa hayt apaar. ||2||
The person who has infinite love for the Guru is like a well respected bride enjoying marital bliss.
سوبھاۄنّتیِسوہاگنھیِجِنگُرکاہیتُاپارُ
ہیت اپار ۔ انتہائی محبت

ਪੂਰੈ ਭਾਗਿ ਸਤਗੁਰੁ ਮਿਲੈ ਜਾ ਭਾਗੈ ਕਾ ਉਦਉ ਹੋਇ ॥
poorai bhaag satgur milai jaa bhaagai kaa ud-u ho-ay.
It is only by perfect good fortune, that a person’s destiny awakes, and he meets the true Guru.
پوُرےَبھاگِستگُرُمِلےَجابھاگےَکااُدءُہوءِ
جاکے بھاگے ادے ہوئے۔ قسمت بیدار ہو
بلند قسمت سے جب سچامرشد مل جاتا ہے

ਅੰਤਰਹੁ ਦੁਖੁ ਭ੍ਰਮੁ ਕਟੀਐ ਸੁਖੁ ਪਰਾਪਤਿ ਹੋਇ ॥
antrahu dukh bharam katee-ai sukh paraapat ho-ay.
Sufferings and doubts are removed from within, and peace is obtained.
انّترہُدُکھُبھ٘رمُکٹیِئےَسُکھُپراپتِہوءِ
۔ بھرم ۔ شک
تواسکے اندرونی عذاب اور شک وشبہات مٹ جاتے ہیں اور آرام و آسائش پاتا ہے

ਗੁਰ ਕੈ ਭਾਣੈ ਜੋ ਚਲੈ ਦੁਖੁ ਨ ਪਾਵੈ ਕੋਇ ॥੩॥
gur kai bhaanai jo chalai dukh na paavai ko-ay. ||3||
One who accepts the Guru’s Will never suffers any pain. ||3||

گُرکےَبھانھےَجوچلےَدُکھُنپاۄےَکوءِ
اور رضائے مرشد میں رہتا ہے کوئی دکھ نہیں اُٹھاتا ۔

ਗੁਰ ਕੇ ਭਾਣੇ ਵਿਚਿ ਅੰਮ੍ਰਿਤੁ ਹੈ ਸਹਜੇ ਪਾਵੈ ਕੋਇ ॥
gur kay bhaanay vich amrit hai sehjay paavai ko-ay.
The Amrit, the Ambrosial Nectar is in the Guru’s Will. With intuitive ease, it is obtained.
گُرکےبھانھےۄِچِانّم٘رِتُہےَسہجےپاۄےَکوءِ
سہجے ۔ روحانی سکون میں
مرشدکی رضا آب حیات ہے ۔ مگر کسی کو ہی قدرتی ملتا ہے

ਜਿਨਾ ਪਰਾਪਤਿ ਤਿਨ ਪੀਆ ਹਉਮੈ ਵਿਚਹੁ ਖੋਇ ॥
jinaa paraapat tin pee-aa ha-umai vichahu kho-ay.
They who have obtained this nectar, they have partaken it by dispelling their ego from within
جِناپراپتِتِنپیِیاہئُمےَۄِچہُکھوءِ
پراپت ۔ حصول
اور خودی مٹاکر پیتے ہیں جنہیں ملتا ہے

ਨਾਨਕ ਗੁਰਮੁਖਿ ਨਾਮੁ ਧਿਆਈਐ ਸਚਿ ਮਿਲਾਵਾ ਹੋਇ ॥੪॥੧੩॥੪੬॥
naanak gurmukh naam Dhi-aa-ee-ai sach milaavaa ho-ay. ||4||13||46||
O’ Nanak, following the Guru’s teachings we should meditate on God’s Name with love and devotion, so that we can unite with Him
نانکگُرمُکھِنامُدھِیائیِئےَسچِمِلاۄاہوءِ
اے نانک مرشد کے وسیلے سے الہٰی نام کی ریاض سے الہٰی ملاپ ہو جاتا ہے ۔

ਸਿਰੀਰਾਗੁ ਮਹਲਾ ੩ ॥
sireeraag mehlaa 3.
Siree Raag, by the Third Guru:
سری راگ محلا 3

ਜਾ ਪਿਰੁ ਜਾਣੈ ਆਪਣਾ ਤਨੁ ਮਨੁ ਅਗੈ ਧਰੇਇ ॥
jaa pir jaanai aapnaa tan man agai Dharay-ay.
When a soul (bride) recognizes God (as her spouse), she surrenders her body and mind to Him

جاپِرُجانھےَآپنھاتنُمنُاگےَدھرےءِ
جب انسان خداوند کریم کواپنا خداسمجھنے لگتا ہے تو دل و جان اسکے حوالے کرتا ہے

ਸੋਹਾਗਣੀ ਕਰਮ ਕਮਾਵਦੀਆ ਸੇਈ ਕਰਮ ਕਰੇਇ ॥
sohaaganee karam kamaavdee-aa say-ee karam karay-i.
Than this soul (bride) does the deeds like the eternally united soules (happily wedded brides)
سوہاگنھیِکرمکماۄدیِیاسیئیِکرمکرےءِ
سوہاگنی۔خدا رسدہ ۔
تب انسان خورسنددوں ۔ خدا رسیدوں نیک خواہوں کے سے اعمال کرنے لگتا ہے

ਸਹਜੇ ਸਾਚਿ ਮਿਲਾਵੜਾ ਸਾਚੁ ਵਡਾਈ ਦੇਇ ॥੧॥
sehjay saach milaavrhaa saach vadaa-ee day-ay. ||1||
With intuitive ease, you shall merge with the True God, and He shall bless you with true greatness. ||1||
سہجےساچِمِلاۄڑاساچُۄڈائیِدےءِ
جس سےآسانی سے خدا سے ملاپ ہوجاتا ہے ۔ اور سچی عظمت و شہرت پاتا ہے ۔

ਭਾਈ ਰੇ ਗੁਰ ਬਿਨੁ ਭਗਤਿ ਨ ਹੋਇ ॥
bhaa-ee ray gur bin bhagat na ho-ay.
O’ brothers, without the Guru, there is no devotional worship.
بھائیِرےگُربِنُبھگتِنہوءِ
اے بھائی مرشد کے وسیلے کے بغیر عشق الہٰی عبادت نہیں ہو سکتی

ਬਿਨੁ ਗੁਰ ਭਗਤਿ ਨ ਪਾਈਐ ਜੇ ਲੋਚੈ ਸਭੁ ਕੋਇ ॥੧॥ ਰਹਾਉ ॥
bin gur bhagat na paa-ee-ai jay lochai sabh ko-ay. ||1|| rahaa-o.
Even if everyone may long for it, still without the Guru’s guidance, God’s worship cannot be done.
بِنُگُربھگتِنپائیِئےَجےلوچےَسبھُکوءِ
لوپے ۔ چاہے
واہ کسی کی کتنی خواہش کیوں نہ ہو مرشد کے بغیر عبادت نہیں ہو سکتی

ਲਖ ਚਉਰਾਸੀਹ ਫੇਰੁ ਪਇਆ ਕਾਮਣਿ ਦੂਜੈ ਭਾਇ ॥
lakh cha-oraaseeh fayr pa-i-aa kaaman doojai bhaa-ay.
The soul (bride), who remains caught in duality (love for things other than God) wanders through millions of existences.
لکھچئُراسیِہپھیرُپئِیاکامنھِدوُجےَبھاءِ
چوراسی ۔ چوراسی لاکھ جاندار کی اقسام
۔اے انسان روئی دویش اور دوسروں کے عشق سے چوراسی لاکھو ں یعنی تناسخ میں پڑا رہتا ہے

ਬਿਨੁ ਗੁਰ ਨੀਦ ਨ ਆਵਈ ਦੁਖੀ ਰੈਣਿ ਵਿਹਾਇ ॥
bin gur need na aavee dukhee rain vihaa-ay.
Without the Guru’s guidance, she finds no sleep (no rest), and spends the night (her life) in agony.
بِنُگُرنیِدنآۄئیِدُکھیِریَنھِۄِہاءِ
دکھی ۔ عذاب ۔ مشکل
مرشد کے بغیر سکون نہیں ملتا عمر عذاب میں گذرتی ہے

ਬਿਨੁ ਸਬਦੈ ਪਿਰੁ ਨ ਪਾਈਐ ਬਿਰਥਾ ਜਨਮੁ ਗਵਾਇ ॥੨॥
bin sabdai pir na paa-ee-ai birthaa janam gavaa-ay. ||2||
Without the Guru’s word the soul (bride) cannot realize God (husband) and wastes away life in vain
بِنُسبدےَپِرُنپائیِئےَبِرتھاجنمُگۄاءِ
۔ کلمہ کے بغیر پیارے سے ملاپ نہیں ہوتا زندگی بیکار بیفائدہ گذر جاتی ہے